عروض، ایجاد تہ الہام


alkhalil
أبو عبد الرحمن الخليل بن أحمد الفراهيدي
718-786

"(پرانین) تواریخ (نویسن) تہ علم لغات (کین عالمن) چھہ بہت اوسمت زِ خلیلس برونہہ چھیہ نا کٲنسی عدبی شاعری ہندس وزنس متعلق کُنہِ قسمہ کین قاعدن ہنز کانہہ زان ٲسمژ تہ نہ چھہ خلیلس برونٹھہ کنہِ امہ نوعیژ ہند بییہ کُنہِ زبانۍ ہند کانہہ رہنما نمونہ اوسمت، تہ توے کنۍ چھہ تسندِ دسۍ عروض اختراع سپدنک واقعہ یہ دپۍ زِ تہِ الہامک نتیجہ گنزرنہ آمت” رحمن راہی، کاشرِ شاعری تہ وزنک صورت حال (ص 13)

خلیلن کتھہ پاٹھۍ کور علم عروض "ایجاد”؟ تتھ متعلق چھیہ واریاہ کہانی۔ مثلا اکھ یہ زِ اکہ ساتہ ییلہ خلیل بصرہ شہرچ کوچہ گردی کران اوس ،امس گوو اتہِ ٹھانٹھرۍ ٹاسن ہند آہنگ کنن تہ یکدم پیوو امۍ سندس ذہنس منز عربی شاعری ہندِ آہنگک اصول تھنہ۔ دپان خلیل گوو فورا گرہ تہ ریتس کھنڈس ژاو چلس، تورہ ییلہ واپس دراو، عروضک نظریہ اوس مکمل سپدمت۔ تمۍ ٲس تمام عربی شاعری ہنز تقطیع کرتھ امکۍ تمام آہنگ بدِ کڈۍ متۍ۔ یہ یا خلیل نس اتھ "ایجادس” سیتۍ منسوب یژھہ باقی کہانی چھیہ صرف داستانہ مگر یمن منز چھہِ سیٹھا اہم تہ دلچسپ نکتہ تہِ پوشیدہ۔ مثلا یہ اہم کتھ زِ خلیلن عروضی نظریہ چھہ تجرباتی فکرِ تہ تکنیکہِ ہند نتیجہ۔ نیوٹن تہ تسندِ ژونٹچ داستان تہِ چھیہ یتھے نکتہ پیش کران۔ امی لحاظہ چھہ اتھ علمس اختراع وننہ آمت۔

خلیل نہِ امہ کہانی ہندۍ الگ الگ روپ چھہِ ابن خلقان سنزِ وفیات الاعیان (جلد2 ص 242)، یاقوت الحمادی سنز معجم الادباء(جلد 4 ص182)، ابن المعتز سنزِ طبقات الشعرا ء (ص96-95)۔ المرزبانی سنز نورالقبس (ص85)، تہ ابن الانباری سنزِ نزہۃ الالباء (ص 47-46)  کتابن منز درج۔ پیتھاگورسس متعلق تہِ چھیہ ٹھانٹھرۍ کہانی مشہور زِ ٹھانٹھرۍ ٹاس بوزتھ کور تمۍ موسیقی ہندین وقفن ہند نظریہ تخلیق۔ (وچھو B. Farrington سنز کتاب Greek Science, Its Meaning for Us, 1961, p.50)۔

یہ کہانی خلیل نس عروضس پیٹھ تہِ لاگو کرنہ سیتۍ چھیہ یتھ نکتس تایید سپدان زِ امہ عروضچ ابتدا ٲس پیتھاگورس سندِ نظریکۍ پاٹھۍ تجرباتی ۔ سنسکرت عروض کس ایجادس متعلق تہِ چھیہ یتھے پاٹھۍ واریاہ کہانی موجود۔ اکیک ذکر چھہ بیرونی تہِ کران۔

پرٲنس دنیاہس منز اوس سارۍ سے علمس الہام وننہ یوان۔ شاعری تہِ ٲس الہامے ماننہ یوان۔ اتھ اعتقادس پتہ کنہِ اوس یہ مذہبی خیال زِ انسان سند سورے علم چھہ خدایہ سندِ طرفہ تسنزن ضرورتن مدنظر رژھ رژھ ودیعت سپدان۔ انسانہ سند علم چھہ امہِ نظریہ کنۍ وحی الاہی یک نتیجہ۔ اگر الہام ازۍ کس محدود معنیس منز نمون نہ، تیلہِ چھیہ نہ یہ کانہہ اسنۍ لایق یا تعجب کھینۍ لایق کتھ اگر عالمو خلیل سندس عروضس الہام وونمت اوس۔

2 خیالات “عروض، ایجاد تہ الہام” پہ

    1. اتھ منز چھہ نہ کانہہ شک ز موسیقی آیہ گۅڈہ ، عروض پتہ۔ خلیل اوس موسیقی (نغم) ہند تہِ ماہر۔ تمیک چھہ عروضس منز سیٹھا دخل۔ موسیقی ہند چھہ عروضس منز دخل مگر یم چھہ زہ الگ میدان۔ البتہ موسیقی منز چھہ نہ غروضک کانہہ دخل۔

      پسند کریں

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s