کاشر رسالہ واد (قسط 4 )


وادکۍ اداریہ چھہ گواہ زِ  1980 اندۍ پکھۍ یۅس پُے ادبس کن آے، تمن نش ٲسۍ واریاہ سوال، پتمیو پُیو ہندِ کھوتہ زیادہ سوال، مگر سوالے ٲتۍ۔ تم ہیکۍ نہ سوالو برونہہ پٔکتھ۔ تمو کرۍ صرف سوال، تمو ژھٲنڈۍ نہ تمن ہندۍ جواب۔ پرانین پُین نش یتھی تتھی سہی ٲسۍ جواب۔ سوال اگر کمے ٲسۍ مگر جوابن ہنز تشفی تہِ ٲسکھ حاصل۔ واد کین اداریہن منز ٲسۍ زیادہ تر سوال تہ صرف سوال کرنہ یوان۔

گۅڈنکس شمارس منز آو وننہ زِ ادیب چھہ سماجک ساروے کھوتہ زیادہ حساس انگ، مگر یس "زنا بالجبر” اسہِ سیتۍ سپدان چھہ تمچ گواہی چھہ نہ سون کانہہ ادیب دوان تکیازِ تمن بچارن نہ چھہ کُنہ سماجی ڈھانچک کانہہ تارپود پتہ تہ نہ چھکھ انسان نوِ سرہ سرنک تہ گرنک کانہہ ولولہ۔ مزید چھہ یہ وننہ آمت زِ "ادب چھہ اکہ سماجچ اندرونی خود آگہی، تہ کانہہ نفر ہیکہِ نہ توت تام ادیب بٔنتھ یوت تام نہ تسند پنن شعور بالغ آسہِ۔ یوت تام نہ سہ انسانی حالژ سنیومت آسہِ تہ امہ سیتۍ حیران تہ پریشان گومت آسہِ۔ یوت تام نہ سہ کُنہِ تبدیلی تہ شاید بہتری ہند طلب گار آسہِ۔ ادیبس گژھہِ انسان سندین وجودی تہ ماورایی کھرین ہند زبردست احساس آسن۔ یمنے کھرین ہنز ورگہ وۅکھنے چھیہ ادیب سنز کٲم مگر یہ وۅکھنے گژھہِ تمہ اندازہ کرنہ ینۍ یُتھ زن یمن کھرین ہند شعور پرن والین تہِ شدت سان سپدِ تہ شاید یم کھرۍ کاسنک کانہہ جذبہ تہِ وۅتلہِ تہندین دلن اندر۔”

دویمس شمارس منز چھہ امہ سماجی شعور پتہ تاریخی شعورچ کتھ تُلنہ آمژ تہ یہ وننہ آمت زِ جمٲژ یا فرد  ہیکہِ نہ تاریخ زاننہ ورٲے پننۍ ذاتھ پہچٲنتھ،  پنن وجود رژھرٲوتھ تہ ارتقا پرٲوتھ۔ سارنے متن تہ تہذیبن اتھ معاملس منز پتھ زٲنتھ چھہ وننہ آمت زِ اسلام کہ ابتدایی عروجک اکھ بوڈ وجہ چھہ اسلامک زبردست تہ سرون تاریخی شعور تہ سیتی چھہ یہ تہِ وننہ آمت ز مارکسس  اوس تاریخک شدید ترین احساس تہ کانہہ تہِ بامقصد ہمکال دانشور ہیکہِ نہ مارکسس نظرانداز کٔرتھ۔

تریمس شمارس منز چھہ زبانۍ ہند شعور چکاونہ آمت۔ زبانۍ ہند تنقیدی شعور چھہ انسانی علوم تہ تاریخ زاننہ خاطرہ اہم قرار دنہ آمت۔ وننہ چھہ آمت زِ سماجک  با رعایت تہ با اثر طبقہ چھہ پننۍ زبان اصل تہ معیاری زبان ویندنک کچل بہہ مون کران تہ پننین مفادن قومی حیثیت بخشان۔ لہذا چھیہ زبانۍ ہنز حد بندیہ پھٹراونچ سفارش کرنہ آمژ۔

ژورم شمارہ چھہ شاعری متعلق سوالہ ہا پرژھان زِ شاعری کُس چیز چھہ شاعری بناوان؟ کیا شاعری پرکھاونۍ چھا ممکن؟ شاعری چھہِ کٲتیاہ پہلو۔ ہیتی، فنی، موضوعاتی، اسلوبیاتی، نظریاتی تہ جمالیاتی پہلو۔ سوال چھہ کرنہ آمت زِ یمو منزہ کس پہلو چھہ شاعری، شاعری بناوان؟

پٍنژمس شمارس منز چھہ "آتش چنار” کہ حوالہ پرژھنہ آمت ییلہ شیخ عبداللہ 1975 منز دِلہِ الحاق کٔرتھ آو تہ ریاستس منز 1953 ہچ قانونی حیثیت بحال کرنک وعدہ کرنہ آو، کاشر یس 53 ہس منز سکولن منز اوس تراونہ آمت، کیازِ آو مشراونہ؟ ہندی تہ اردو کیازِ سپدۍ اسہِ پیٹھ مسلط؟

شیمس شمارس منز چھیہ پرن والین ہنزِ متواتر شکایژ جواب دنچ کوشش کرنہ آمژ ز واد چھہ اکثر غیر شایستہ لفظ ورتاوان یس غیر صحت مند چھہ۔ ادارہ چھہ صحت مند صحافتس کھوکھرۍ مفروضہ تہ نظریاتی بلف ؤنتھ رد کران۔ وننہ چھہ آمت زِ زبان شایستہ تہ غیر شایستہ زمرن منز بٲگراونۍ چھہ نہ کانہہ لسانی اصول۔

ستمس شمارس منز چھہِ افسانس متعلق تقریبا تمے سوال پرژھنہ آمتۍ یم شاعری پیٹھ ژورمس شمارس منز پرزھنہ آمتۍ ٲسۍ۔ افسانہ کتھ ونو؟ یہ پرکھاون چھا ممکن؟ اکھ خاص کتھ  چھیہ یہ وننہ آمژ  زِ شاعری منز چھہ نہ کال نظرِ گژھان۔ شاعری ہند وق چھہ روحانی ییلہ زن افسانہ فزیکل وقتک پابند چھہ۔

ٲٹھمس شمارس منز چھہ وننہ آمت زِ کانہہ تہِ چیز مۅلونہ خاطرہ چھیہ اکھ کہوٹ آسنۍ لازمی۔ یم معیار چھہِ نہ کالہ پگاہ بنان بلکہ چھہِ زیٹھہِ انسانی تجربکۍ پیداوار۔ کہوچن ہند تعلق چھہ کُنہِ جمٲژ یا فردہ سندس نظریہ حیاتس سیتۍ۔ اکہ سیتۍ ییہِ بیاکھ پہچاننہ۔ سوال چھہ پرژھنہ آمت زِ اکہ زمانہ چہ کہوچہ ہیکنا بییس زمانس منز لگہ ہار ٲستھ؟ اگر اسۍ حقیقت ہمیشہ بدلونۍ مانون، کہوچہ تہِ بدلن۔ اگر نہ، تیلہِ روزن معیار پریتھ زمانس منز لگہ ہار۔ وننہ چھہ آمت ز از چھیہ نہ اسہِ پرانین کہوچن پیٹھ پژھ روزمژ مگر نوِ کہوچہ تہِ چھہِ نہ بنٲوتھ ہیکان۔

نوۍ مس شمارس چھہِ زہ حصہ۔ اکھ حصہ چھہ مہجور سنزِ صد سالہ برسی پیٹھ اکاڈمی ہندس سیمنارس متعلق۔ اتھ سیمنارس منز شامل کینژن کھۅکھرین دانشورن ہندِ بہانہ چھہ وننہ آمت زِ "سون ناخواندہ دانشور طبقہ چھہ ہونین ہندِ کھوتہ بدتر۔ ہونس گژھہِ اڈج ٹکنہ باپتھ آسنۍ پتہ چھیس نہ کھسنۍ۔” دویمس حصس منز چھہِ ونان زِ سانہِ شاعری ہند بوڈ حصہ چھہ صوفی شاعری یمۍ لکہ شاعری ہند لب لہجہ ورتوو۔ مگر سیتی چھہ وننہ آمت ز "لکہ شاعری (چھہ نہ)  پنن کانہہ لب و لہجہ۔” امہ علاوہ چھیہ عروضس تہ کاشرن لین متعلق تمے کتھہ پننہِ فہمہ موجب وننہ آمژہ یم امین کاملن مہجور سیمنارس منز پننس مقالس منز ونہِ مژہ آسہ۔ کامل چھہ خطس منز لیکھان ” مہجورنس ہتۍ مس وہروادس پیٹھ پور میہ اکھ مقالہ۔ کٲنسہ شاعرس عروضی بنیٲز  پیٹھ سام ہینچ ٲس یہ گۅڈنچ کوشش۔ اتھ اندر اوس اکھ کاشر لیہ نظام ترتیب دنک تجویز پیش کرنہ آمت۔  دۅشوے کتھہ (چھو) حوالہ ورٲے کھتاوِ مژہ۔”

دہمس شمارس منز چھیہ کشیرِ ہندس اعتقادی ارتقاہس مختصر سام ہینہ آمژ۔ بدھ مت کتھہ پاٹھۍ آو ختم کرنہ۔ تمہ پتہ کتھہ پاٹھۍ پھانپھلیوو شیومت یمیک مشہور فلسفی ابھنو گپت اوس۔ وننہ چھہ آمت ” شیو متک مانن چھہ زِ کاینات چھہ آفاقی ژیتہ شکتی ہند ظہور۔ یہے شکتی چھیہ پریتھ رنگس منز جلوہ گر تہ یمۍ انسانن یہ ژیتر پروو، سہ پراوِ نجاتھ۔” امہ پتہ چھہ اسلام یوان یمہ پتہ کشیرِ واریاہ سیاسی، سماجی تہ تاریخی گٲیلہ گے تہ نتیجہ دراو زِ کشیرِ ہنز فلسفیانہ روایت مۅیہ۔ مگر یمو عظیم روایتو چھہ سانین لکہ روایژن پیٹھ سرون اثر تروومت۔ لل دیدِ پیٹھ شیومت تہ شیخ العالمس پیٹھ اسلامک تہ شیو تہ بودھ متک تہِ اثر چھہِ ٹاکارہ۔ صوفی شاعری پیٹھ تہِ چھہ یمن عظیم روایژن ہند اثر نون تہ ٹاکارہ۔ سوال چھہ پرژھنہ آمت زِ موجودہ دورچہ کاشرِ شاعری منز تہِ چھا یمہ روایژ درینٹھۍ گژھان کنہ نہ؟

کہمس شمارس منز چھہ وننہ آمت ” کانہہ تہِ قوم چھہ نہ مذہب کس بنیادس پیٹھ پھبتھ ہیوکمت۔ بدیشی مذہب چھہ نہ قومن ہنز تہذیبی ساخت تہ جبلی عمل بدلٲوتھ ہیکان یعنی مذہبی تبدیلی چھیہ نہ تہذیبی تبدیلی بٔنتھ ہیکان۔ بدیشی مذہب چھہ اکی تہذیب تہ تمدن کین مختلف طبقن منز بینیر پیدہ کٔرتھ یمن پانوانۍ ژوناوان تہ فسادات کرناوان۔ کاشر چھہ پننہِ تہذیب تہ تمدن کنۍ اکھ قوم تہ کاشر س چھیہ پننۍ اکھ تہذیبی تہ تمدنی شناخت تہ مذہبی تہ سیاسی گٲیلو کنۍ گے کاشرۍ سنز تہذیبی شناخت مسخ تہ کاشر آو طبقن تہ ورگن منز بٲگرنہ۔ طبقن تہ ورگن ہنز زبان گیہ بیون۔ ” ٲخرس پیٹھ چھہ تجویز پیش کرنہ آمت "کاشرِ تہذیبی وحدتچ بازیافت چھیہ تیلی ممکن ییلہ زن اسۍ ساری اکھ اکۍ سندین معاملاتن منز شریک سپدو۔”

بہم شمارہ چھہ فلسفہ چکاوان۔ ونان چھہِ  زِ انسانی روحک یس روایتی تصور اسہِ نش چھہ سہ چھہ یہ زِ "روح چھہ اکھ لافانی شے، یتھ پیٹھ نہ وقتک کانہہ اثر چھہ۔ یۅہے روح پرزناونک تلقین چھہِ سانۍ صوفی شاعر کران، مگر زبان چھیہ اکھ تاریخی شے، لہذا اگر اسۍ انسانی شخصیتک یہ تصور پاننٲوتھ کُنہِ فن پارس سام ہیمو تہ کتھہ پاٹھۍ؟ ادبی تنقیدس منز چھیہ تاریخ مخالف نہجہِ سیٹھا سرنۍ مول۔ آفاقی ادب تہ آفاقی جمالیات ہوۍ تصور چھہِ امی نہجہ ہندۍ پیداوار۔ اسہِ پییہ پننین تنقیدی پرمانن نوِ سرہ سام ہینۍ۔ یہ کتھ چھیہ لازمی ز ادب مۅلونہ برونہہ گژھہِ یہ کتھ واضح آسنۍ زِ انسانس متعلق کیا چھہ سون تصور۔” امہ شمارہ کس دویمس حصس منز چھہ مہجور صد سالہ سیمنارس متعلق وننہ آمت زِ مہجور سندس فنس پیٹھ کتھ کرنہ برونہہ پزِ سرہ کرن تسند نظریہ کیا چھہ اوسمت؟ نظریچ اہمیت تہ کارکردگی کیا چھیہ ادبس منز؟ مہجور سندس جمالیاتس، بوطیقا، لسانی اہمیژ پیٹھ چھہِ سوال ہا کٔرتھ وننہ آمت زِ یمن مسلن پیٹھ آو نہ اکاڈمی ہندس سیمنارس منز کانہہ مقالہ پرنہ۔ "سیمنارس منز آو فقط درامن کرنہ۔”

تروٲہم شمارہ چھہ ادبچ تہ تنقیدچ فرق یتھہ پاٹھۍ سمجاوان تہ کاشرس تنقیدس متعلق حکم دوان "ادب یودوے زن کانہہ ادراکی علم چھہ نہ تہ یودوے زن اتھ عقلہِ تہ منظقس سیتۍ زیادہ واٹھ چھہ نہ مگر ادبی تنقید چھہ اکھ منطقی تہ ادراکی علم۔ ادبس متعلق مختلف سوالن نظریاتی سۅتھرس پیٹھ جواب ژھارنس منز چھہِ اسۍ عقلی تہ منطقی دلیلن کٲم ہیوان تہ تنقید بامعنی تہ با مقصد بناونہ باپتھ چھہ لازمی زِ تنقید نگارس گژھہِ عقلی تہ منطقی صلاحیژو واش آسن کوڈمت۔ تمۍ سندۍ تجربات تہ مشاہدات گژھن کافی وسیع آسنۍ تہ تس گژھہِ علمک تہِ اتھہ روٹ آسن۔ بییہ گژھہِ تس انسانی لاشعور سمجنچ صلاحیت آسنۍ۔ بدقسمتی چھیہ یہ زِ ییلہ اسۍ کاشرس ادبی تنقیدس سام چھہِ ہیوان، اسہِ چھہ نہ یُتھ کانہہ تنقید نگار درینٹھۍ گژھان۔”

ژۅدٲہمس شمارس منز چھیہ ساہتیہ اکاڈمی تہ ریاستی کلچرل اکاڈمی تنقیدک ہدف بناونہ آمژہ۔ ساہتیہ اکاڈمی متعلق چھہ وننہ آمت "کاشرس منز یمہ تہِ کتابہ ساہتیہ اکاڈمی ہندِ طرفہ شایع سپزہ، ترجمہ یا تخلیق رنگۍ، (تم) چھیہ حیرانگی ہندس حدس تام زبانۍ رنگۍ غلط تہ موادہ رنگۍ ناموزون۔ ساہتیہ اکاڈمی چھیہ کاشرِ تہذیب تہ تمدنچ بیخ کڈنہ باپتھ زبردست کوشش کران۔ منافق تہ ناہنجار لوکن ہنزہ کتابہ شایع کٔرتھ چھیہ اکاڈمی کاشرکۍ مول پراٹان۔ وننہ چھہ یوان زِ ساہتیہ اکاڈمی منز چھیہ ژونٹھۍ پیٹہِ، ماچھ بوتلہ، شال تہ ڈونۍ زبردست پاٹھۍ چلان تہ ‘ڈونۍ ادبس’ چھہ پوچھر یوان دنہ۔ ساہتیہ اکاڈمی منز چھہِ وۅنۍ کاشرِ زبانۍ ہنز نمایندگی ریاستی کلچرل اکاڈمی ہندۍ ملازم کران تہ کاشرین کتابن یم جہالت پھیلاوان چھیہ، چھہِ انعامہ دنہ یوان۔” ریاستی کلچرل اکاڈمی متعلق چھہِ ونان ” اکاڈمی یہ کینژھا ادبی مجلسہ، ادبی محفلہ تہ سیمنار کرناونس منز کران چھیہ، سہ چھہ حوصلہ بخش مگر یمہ کتابہ تہ رسالہ اکاڈمی ہندِ طرفہ شایع سپدان چھہِ، تم چھہِ مویوس کن۔ اکاڈمی چھیہ کاشر ڈکشنری شایع کرمژ، ڈکشنری سیتۍ وابستہ ادیبن ہنزِ علمیتک اندازہ چھہ ڈکشنری پٔرتھ سپدان۔ ڈکشنری سیتۍ وابستہ لوکھ چھہِ ناخواندہ تہ جاہل۔ یمن نہ چھہ کاشر صرف و نحو معلوم تہ نہ چھہ یمن ڈکشنری ترتیب دنچ صلاحیت موجود۔” یہ اوس دراصل ڈکشنری پیٹھ میانین مضمونن ہند زور یمو منزہ اکھ اتھۍ ژۅداہمس شمارس منز چھپیوو۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s