وۅپر کیا تہ پنن کیا


 "اکھتے ما ین پتمس ہتس ڈۅڈس ہتس ؤریس منز کاشرس شعرہ
نطقس اگادِ گمژہ واریاہ زبجورِ تہِ مژراونہ۔” 
 –محمد یوسف ٹینگ

"تام رٹہِ تمن عروضہ پاسدارن پتھ یم کاشرِ شاعری زیر کروُن وۅپر
عروضی گہنہ لاگن چھہِ یژھان۔”
–شفیع شوق

 

نیب کس  شمارہ 24 ہس منز وون میہ زِ وزن چھہ شعری ہیژ ہند اکھ حصہ یمہِ کنۍ یہ مثلا غزلہ کہ خاطرہ ضروری بنان چھہ۔ مگر آزاد نظم یا نثری نظمہِ ہندِ تعلقہ یۅس روایتی ہیت مسمار کرنہ خاطرہ وجودس منز آیہ چھہ نہ وزن ضروری حالانکہ اگر ورتاونہ تہِ آو غیر مستحسن تہِ چھہ نہ۔ گویا شاعر ورتاویا وزن کنہ نہ، تمیک دارہ مدارہ چھہ شاعرس پیٹھ۔ شاعر کُس وزنہ نظام ورتاوِ تہ کُس نظام چھہ کُنہِ زبانۍ ہندِ خاطرہ مناسب تہ موافق تہ موزون تہ لگہار، تمیک دارہ مدارہ تہِ چھہ شاعرسے پیٹھ۔ اگر لل دیدِ تہ شیخ العالمن کانہہ خاص نظام ورتوو، تمن باسیوو سے مناسب، موافق تہ لگہار تہ شاید اوسکھ تی برونہہ کنہِ، تہ اگر محمود گامی تہ رسول میرن کانہہ بیاکھ وزنہ نظام تہِ ورتوو تمن باسیوو سہ نظام تہِ موافق تہ لگہار۔

poet

لل دیدِ تہ شیخ العالمن کوتاہ انصاف کور تتھ وزنہ نظامس سیتۍ یُس تمو پننہِ شاعری منز ورتوو، تہِ زاننہ خاطرہ چھہ گۅڈہ سہ نظام سمجن ضروری۔ تمہِ نظامک چھہ نہ ثیقہ پاٹھۍ کٲنسہِ علم، لہذا چھہ اسہِ باسان زِ تہنزِ شاعری ہنز موزونیت چھیہ بے داغ۔ البتہ چھہِ اسۍ تمہِ وزنہ نظام چہ (یعنی فارسی عروض چہ) زانۍ کنۍ محمود گامی تہ رسول میر سندس ورتاوس کٹھہ کڈان یُس تمو پننہ شاعری ہندس اکس اہم حصس منز ورتوو۔ حقیقت چھیہ یہ زِ یم دۅشوے وزنہ نظام چھہِ کَنہ کہ لحاظہ کاشرِکہ خاطرہ ہوی موزون باسان۔ یہ چھہ بیاکھ سوال زِ یمن وزنہ نظامن ہند کُس کُس وزن (یا لے) چھہ کاشرس براہ۔ ممکن چھہ کانہہ وزن(لے) ما ہیکہِ نہ آسان، موافق تہ لگہار ٲستھ، یا موضوع، مقصد تہ لہجہ کہ لحاظہ ما ہیکہِ اکھ وزن (لے) زیادہ مناسب تہ لگہار ٲستھ۔ مثلا یوت تام لل دیدِ تہ شیخ العالم سندِ وزنہ نظامک تعلق چھہ، تمو چھہ تمام شاعری منز صرف اکوے آہنگ ورتوومت یس زن واریاہ حدس تام محدود تہ یک سطحی چھہ۔ شاید اوس یہنزِ شاعری ہنزِ نوعیژ کنۍ یی مناسب۔ لہذا چھہ نہ یہنزِ شاعری منز آہنگک سہ تنوع یُس حبہ خوتونہِ، صوفی شاعرن یا محمود گامی تہ رسول میر سنزِ شاعری منز میلان چھہ۔

اسۍ چھہِ نہ یہ تہِ ؤنتھ ہیکان زِ لل دیدِ تہ شیخ العالم سند وزنہ نظام تہ حبہ خوتونہ ہند وزنہ نظام چھا اکوے کِنہ الگ الگ۔ اکوے وزنہ نظام یُس اسۍ آسانی سان پہچٲنتھ ہیکان چھہِ سہ گوو فارسی وزنہ نظام ۔ امہ الگ یہ کینژھا چھہ تتھ چھہِ اسۍ کُنہِ حجتہ ورٲے پانے کاشر وزنہ نظام ونان۔ اگر اسۍ تجزیاتی نظرِ اتھ وزنہ نظامس وون دمو اسۍ وچھو زِ فارسی وزنہ نظامہ برونہہ چھہ سانہِ تمام تر شاعری منز ہیجلۍ نظام ورتاونہ آمت۔ اتھ ونوا اسۍ کاشر وزنہ نظام کِنہ بیاکھ اکھ وزنہ نظام یُس دنیا چین باقی زبانن منز تہِ رایج چھہ تہ کاشرِ زبانۍ تہ براہ اوس؟  

اسۍ چھہِ یژھے حجتہ زبانۍ متعلق تہِ قایم کران۔ اگر پرون چھہ، سہ گوو پنن تہ اگر نوو چھہ سہ گوو وۅپر۔ سنسکرتی کاشر (مثلا لل دیدِ ہندۍ واکھ) گوو  پنن کاشر تہ فارسی آمیز کاشر (مثلا رسول میرنۍ غزل) گوو وۅپر۔  یتھے پاٹھۍ چھہ ازکل اسۍ  تتھ زبانۍ کاشرچ آلودہ شکل تصور کران یۅس اردو آمیز چھیہ۔

سۅے چھیہ زندہ زبان تہ زندہ ادبی روایت یتھ منز  اثرات پانس منز جذب کرنچ صلاحیت آسہِ۔ یہ تبدیلی چھیہ نہ کانسہِ نفرہ یا جمٲژ ہندِ طرفہ کنہِ منصوبس تحت سپدان بلکہ چھیہ یہ اجتماعی سطحس پیٹھ وارہ وارہ شکل رٹان۔

2 خیالات “وۅپر کیا تہ پنن کیا” پہ

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s