کاشر رسالہ واد (قسط 6) : رفیق راز


nay

واد رسالس منز چھہِ رفیق رازنۍ تہِ چھہِ کل پانژھ غزل  چھپان۔ زہ شمارہ 3 تہ تریہ شمارہ 6 ہس منز۔  راز سندِ غزلہ کہ مقبولیتکۍ ٲسۍ واریاہ وجہ، یمن منز ویز، واضح زبان تہ خیال ورتاونک ہنر شامل چھہ۔ رازن کٔر شہر سرینگرچ زبان (تہ محاورہ) کاشرِ شاعری منز  گۅڈنچہ لٹہِ  متعارف یتھ متعلق کینژن شود کاشر اظہار آسنک دھوکہ لوگ یمن منز علی محمد لون تہ اختر محی الدین ہوۍ بڈۍ ادیب تہِ شامل چھہِ۔

رفیق راز سندِ غزلکۍ لفظ، پیکر تہ استعارہ سٲری ٲسۍ ویدۍ تہ برونہہ کنکۍ تہ صاف تہ شفاف یمن منز نہ کُنہِ شکچ تہ شبہچ گنجایش ٲس۔ آہنگ تہ ردیف قافیہ کنۍ تہِ اوس سہ تم زمینہ تیار کران یمن منز یاد روزنچ، زیوِ پیٹھ پھرنچ تہ بجایہ خۅد معنہ ساوۍ آسنچ صلاحیت موجود ٲس۔ رازن کرۍ کینہہ لفظ  بار بار تہ رنگہ رنگہ ورتٲوتھ پننہِ شاعری ہندِ خاطرہ مخصوص۔ امۍ سندین عشقیہ تجربن ہنز  ایمایت ٲس شاعری سیتۍ دلچسپی تھاون وٲلس امۍ سندس ہم عمر طبقس خاص طور پانس سیتۍ پکناوان۔

راز  سنزِ شاعری منز چھیہ نہ کانہہ موضوعاتی دلچسپی نظرِ گژھان۔ امۍ سند زیادہ تر فوکس چھہ موجود ژہس پیٹھ تہ امی مجود ژہہ کہ درچہ منزۍ چھہ سہ انسانی تجربن ہنزہ ژھایہ تہ رایہ گاشراوان تہ تہِ کٔرتھ اتھ ژہس  لازوال بناوان۔ راز چھہ پرن وٲلس بدل کنہِ دنیاہس منز  منتقل کرنہ بجایہ تہندے دنیا گاشراوان تہ تبدیل کران۔ راز سندۍ غزلن دیت پرن وٲلس تمہ ساتہ تہِ یہ نہ تس دستیاب اوس۔ کینہہ شعر:

اکھ چشمہ جورۍ ٲس کراں زول راتھ تام
سۅے چشمہ جورۍ از تہِ سراپا مگر سوال

 اکھ دما بیوٹھ میہ نش آرہ پلس پیٹھ تہ وونن
پوت نظر دی نہ یہ ردیاو میہ وونمس نہ کہنی

 بہ زن یور کن  پتھرِ پیومت کھلاڑۍ
ژہ زن ٲنتھہ روس ہالہ میدان ہیو

 ژیہ چھے نا زنہے وۅش تہِ نیرتھ ژلان
ژہ تے چھکھ میہ ہیو عین انسان ہیو

گلابس ژھٹن زن چھہ گاشر سحر
کنڈس پیٹھ چھہ تارکھ تہِ لرزان ہیو

بہ زن گردِ اندر افق تا افق
ہوا زنتہ ازلے میہ زاگان ہیو

لامکاں وٲتھ کڈن فرمان بیاکھ
تالہ پیٹھ تھونم ظہرۍ اسمان بیاکھ

تار ییلہ سدرس لبو واتو اپور
ٲس وہرتھ آسہِ ریگستان بیاکھ

رفیق راز سنزہ چھیہِ زہ کاشرۍ شعرہ سۅمبرنہ شایع سپزمژہ – نے چھیہ نالاں تہ دستاویز۔ یمو منزہ چھہ گۅڈنکس ساہتیہ اکاڈمی ایوارڈ تورمت۔

کاشر رسالہ واد (قسط 6) : رفیق راز” پر 2 تبصرے

  1. وادکہ حوالہ میانہ شاعری پیٹھہ چون یہ تبصرہ پرتھہ چھے تشنگی ہش روزان۔ تبصرہ چھہ جان مگر وضاحت طلب چھہ۔ ہر یہ تبصرہ ژہ بییہ ہن بروبہہ پکناوکھہ یہ بنہ اکھہ باگہ بورتھہ مضمون۔

    پسند کریں

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s