کاشر رسالہ واد (قسط 5) : قاضی غلام محمد

qazi

وادس منز چھپن والین غزلن منز آسہ تمہ وقتہ چہ کینہہ نوِ تہ توانا آوازہ یمو منزہ قاضی غلام محمد، رفیق راز، م ح ظفر تہ شفیع شوق سند ذکر خاص طور ضروری چھہ۔

قاضی غلام محمد سندۍ چھپییہ کل شیہ غزل – زہ شمارہ 1، زہ شمارہ 4 تہ اکھ اکھ شمارہ 6 تہ 8 منز۔ قاضی سند غزل سپد امہ چہ متاثر کن تازگی کنۍ سیٹھا مقبول، مگر کم گو آسنہ کنۍ ہیوک نہ یہ غزل پورہ پاٹھۍ شعری منظرنامس منز کاڈ کڈتھ۔

قاضی سندِ غزلچ تازگی چھیہ امہ کین شعرن ہنزِ طلسمی حیرت انگیزی علاوہ ویدۍ تہ عام مضمون ژیتس منز درن واجنین دلکش/غیر معمولی بصری صرژن ہندِ ورتاوہ کنۍ۔ امۍ سندۍ غزل چھہِ عصری حقیقت نش دور (شاید فرار کٔرتھ) پننس پانس منز اکھ طلسمی، حیرت آمیز (سہ حیرت یتھ منز خوفہ بدلہ احترام تہ کرامٲژ ہند جذبہ آسہِ)، خوبصورت تہ وفا شعار دنیا آباد کران۔ شاعر چھہ تخیل کہ قوتہ سیتۍ امکاناتن ہنزہ تژھہ صورژہ تخلیق کران یم ظاہری دنیاہس سیتۍ مماثلت تھٲوتھ تہِ تمہ نیبر باسان چھیہ۔ دویمین لفظن منز ونو ز قاضی سندین شعرن ہنز سیٹنگ چھیہ حقیقی منظرن بجایہ خوابن ہنزہ صورژہ باسان۔

بنمین شعرہ مثالن منز چھہ گۅڈنیک شعر قاضی سنزِ شاعری ہنز کونز۔

بقول شہناز رشید قاضی سنز شعرہ سۅمبرن چھیہ "صورت خانہ” ناوہ چھپیمژ یتھ منز الہ پلہ غزل 25 مرہ چھہِ۔

اچھ وٹتھ بیہہ یہ اوند تہ پوکھ مشراو
صورژن ہند نگار خانہ سجاو
میون دل رنگہ موت چھہ معصوم شُر
چانۍ یاداوری چھیہ سبز الاو
خاصہ جامن کزلۍ ونن تس گٔے
تاپھ کیا کرنہِ میون کُٹھ ژایاو

تتھہ پاٹھۍ ژہ پیہم راتھ ژیتس
زن کاوہ قمیر ژول بونیو تلۍ
پوت ژھایہ کزلۍ اچھ ٲنہ بدن
تمہ بازرہ ہیمہا کیا کیا ملۍ

درایکھ میہ نش تہ ٲنہ لبن دہہہ ہیوتن وۅتھن
آیکھ میہ نش تہ دٲن تھرین تل گنداں چھہِ خواب

میہ تھوو ٲنہ لبن منز سہ ساتھ مٲنتھر دتھ
دپیوتھ بییہ تہِ گژھیا زانہہ یہ دستیاب وۅلو

تۅہہ نش ما کٲنسہِ جواب؟

"بٲتن الگ الگ تاریخ آسن چھہ نہ ضروری تکیازِ شاعری چھیہ نہ تاریخواری مطابق
مۅلۅن سپدان۔ وۅنۍ گوو فروعی معاملہ ؤنراونس چھہِ کم کاسہِ مدد کران۔”
— امین کامل، سرنامہ ‘یم میانۍ سۅخن’

"شاعری چھیہ دورن منز لیکھنہ یوان، دۅہن تہ ؤرین منز نہ۔ مگر یہ تہِ گژھہِ
یاد تھاوُن زِ داہ ؤری تہِ ہیکہِ اکھ دور ٲستھ، خاص کر تیزی سان
بدلونس وقتس منز۔”
— منیب الرحمن

شفیع شوقن لیوکھ کاشرِ ادبک تواریخ یُس اکھ بوڈ کارنامہ چھہ۔ میہ چھہ امیک گۅڈنیک ایڈیشن وچھمت یتھ منز واریاہ خٲمیہ آسہ۔ تنہ پیٹھہ آے اتھ زہ تریہ ایڈیشن تہ میہ چھیہ وۅمید گۅڈنکہ ایڈیشن چہ ساریۍ حٲمیہ آسن درو سپزمژہ تکیازِ شوقس ٲس پانہ تمن خٲمین پیٹھ نظر۔  امہ تواریخ علاوہ چھیہ ضرورت زِ کاشرِ ادبہ کس جدید دورس پیٹھ، یُس 1960 پیٹھہ 1980 تام جاری رود، ییہ تواریخی کٲم کرنہ۔ یہ کٲم گوژھ یونیورسٹی ہند کانہہ طالب علم انجام دین۔ یہ ہیکہِ پی ایچ ڈی یک تہِ موضوع بٔنتھ۔ 

کمۍ کیا لیوکھ تہ کر لیوکھ، پتھ کُن لیکھۍ متین چیزن کر تہ کٲژا تبدیلی آیہ کرنہ یمن کتھن پیٹھ گوژھ تحقیق سپدن۔ ادبچ روایت چھیہ نہ ٹی ایس ایلیٹ، جیرالڈ مینلی ہاپکنز سنزہ کتھہ چکاونہ سیتۍ قایم گژھان، نہ چھیہ سۅ خالص کتابہ چھپاونہ سیتۍ قایم گژھان یوت تام نہ اتھ تمام کارکردگی اندۍ اندۍ اکھ ادبی کلچر کھڑا گژھہ،ِ یوت تام نہ یمن چیزن پیٹھ کتھ گژھہِ۔ کتھ چھہ نہ مطلب صرف تجزیہ تہ تنقیدی مضمون بلکہ لیکھن والین، تہنزِ زندگی، تہنزن کتابن، تہندس کلامس متعلق  پریتھ کونہ کتھ سپدِِ۔

سانین بزرگ ادیبن چھہِ ہمیشہ پننین چیزن غلط سنہ تلہ کنہِ دینک عادت اوسمت۔ کلیات مہجورس منز چھہ واریاہن چیز ن غلط سنہ دِتھ، دینا ناتھ نادم سنزِ کتابہِ منز چھہ واریاہن چیزن ٲنی مٲنی سنہ دِتھ۔ تس چھہ نہ یہِ تہ یاد روزان زِ امہ برونہہ ہے میہ اتھۍ چیزس اکھ سنہ دیت، از کتھہ پاٹھۍ دمس بیاکھ سنہ۔ رحمن راہی یس اوس عادت یہ زِ سہ یُس تہ چیز کنہِ رسالس سوزان اوس تتھ اوس شیہ ؤری، داہ ؤری پرون سنہ تلہ کنہِ دتھ تھاوان۔ زن اوس سہ پنن کلام دہن ؤرین پتھ تھٲوتھ پرانہِ شرابکۍ پاٹھۍ مارکس منز کڈان۔ یہ اوس سہ اکھ سوچتھ سمجتھ  گپلہ کران۔ امین کامل، مظفر عازم ہوین شاعرن اوس نہ یہ مسلے تکیازِ یم ٲسۍ سیتی کتابہ چھپاوان۔ کاملن چھپاوِ 1972 تام ژور شعرہ سۅمبرنہ، مظفر عازمن تہ چھپاوِ 1974 تام زہ سۅمبرنہ، مگر باقی شاعر رودۍ کلامہ پتھ کن تھاوان۔ وجہ اوس صاف یتھ پیٹھ بییہ کنہِ ساعتہ کتھ گژھہِ۔

نادم، فراق تہ راہی رودۍ گوش دوان حالانکہ کلچرل اکاڈمی ٲس یہند کلام چھپاونہ خاطرہ ہمیشہ تیار۔ ٲخرس پیٹھ نیہ یمو کنی کتابا چھپٲوتھ، یمن منز چیزن سنہ سیتۍ سیتۍ لیکھکھ چھہِ،  یم اکثر غلط چھہِ۔ یہند یہ وطیرہ وچھتھ ژٔٹ کاملن سلی کتھ۔ تمۍ چھپٲو نہ 1972 پتہ کانہہ کتاب بلکہ سپد سہ 1980 پتہ کاشرِ ادبی ماحول تہ کشیرِ ہندِ ماحولہ نش یوت بدظۅن زِ تمۍ کور شاعری ہند کارخانے بند۔ صرف لیچھن تم خاص نظمہ مثلا تٲے نامہ، حمد تہ لڈی شاہ بیترِ یمن منز تمۍ دراصل اتھ صورت حالس پیٹھ افسوس ظاہر کورمت چھہ۔ اکہ قسمکۍ مرثی۔ ییلہ کامل  2001 منز امریکہ کس چکرس پیٹھ آو اتی نیو میہ تسند سورے کلام تہ کورم جمع کتابہ ہندس صورتس منز۔ نیب رسالہ منزہ تہِ کوڈم قصیدہ تہ باقی نظمہ یم 1972 برونہہ چھپیمتۍ ٲسۍ مگر کاملس اوس نہ کنہِ کتابہ منز شامل کرنک موقعہ میولمت۔ امۍ سنزِ عدم دلچسپی کنۍ لگۍ اتھ کتابہ چھپاونس پانژھ شیہ ؤری۔ تہِ ٲس نہ تس وۅنۍ یہ کلام چھپاونس منز دلچسپی۔

rah

کامل چھہ کاشر ادب رسالس 1967 منز پنن تازہ غزل بحثہ خاطرہ سوزان:

بہار پوک نہ اگر چانہِ ترایہ گرایہ میہ کیا
گلالہ داغ جگر ہیتھ چھہ جایہ جایہ میہ کیا

راہی تہِ چھہ غزل سوزان تہ اتھ تلہ کنہِ لیکھان 1958۔ دہہِ وہرۍ پرون یہ غزل چھپاونک کیا مقصد چھہ اوسمت؟ دہن ؤرین اوس نا امۍ کانہہ نوو غزل وونمت؟ کنہِ یہ اوس تیتھ زبردست غزل یس نہ اگر چھپہِ ہے تہ نقصان گژھہِ ہے۔ وچھو غزل کیا اوس یُس دہہ وہرۍ چھپاون ضروری اوس:

بلۍ تہِ نو آو یہ رنگ حسن خیالس یارو
داغ تھاواں ہا وچھم سونت گلالس یارو

اگر یہ غزل پزۍ پاٹھۍ 1958 ہک اوس۔ راہی سند یہ 1967 منز چھپاوُن چھیہ مندچھ۔ 1967 منز اوس کاشرس منز تہِ دۅہ کتہِ کور ووتمت۔

کامل چھہ سوزان اتھۍ رسالس 1976 منز پننۍ زہ غزل:

سمے صدا چھہ ژہاں سنگرن جگر کس پتھ
گگن ہوا چھہ تلاں تارکن مژر کس پتھ

تہ

لکھ چھہِ پھیراں عجیب باوتھ ہیتھ
معنہ روستے حسیں عبارتھ ہیتھ

راہی تہ چھہ پننۍ نطم "آورن” سوزان ، تلہ کنہِ چھس تاریخ لیکھان 1970۔ شیہ وری پتھ۔
راہی یس کیازِ پننین چیزن تلہ کنہِ تاریخ لیکھنک ضرورت پیوان؟ دویم کتھ سہ کیازِ ہمیشہ شیہ ؤری، داہ ؤری پرون کلام چھپاونہ خاطرہ سوزان؟

یم چھیہ سوچنس لایق کتھہ۔ تۅہہ نش ما کٲنسہِ جواب؟

وۅپر کیا تہ پنن کیا

 "اکھتے ما ین پتمس ہتس ڈۅڈس ہتس ؤریس منز کاشرس شعرہ
نطقس اگادِ گمژہ واریاہ زبجورِ تہِ مژراونہ۔” 
 –محمد یوسف ٹینگ

"تام رٹہِ تمن عروضہ پاسدارن پتھ یم کاشرِ شاعری زیر کروُن وۅپر
عروضی گہنہ لاگن چھہِ یژھان۔”
–شفیع شوق

 

نیب کس  شمارہ 24 ہس منز وون میہ زِ وزن چھہ شعری ہیژ ہند اکھ حصہ یمہِ کنۍ یہ مثلا غزلہ کہ خاطرہ ضروری بنان چھہ۔ مگر آزاد نظم یا نثری نظمہِ ہندِ تعلقہ یۅس روایتی ہیت مسمار کرنہ خاطرہ وجودس منز آیہ چھہ نہ وزن ضروری حالانکہ اگر ورتاونہ تہِ آو غیر مستحسن تہِ چھہ نہ۔ گویا شاعر ورتاویا وزن کنہ نہ، تمیک دارہ مدارہ چھہ شاعرس پیٹھ۔ شاعر کُس وزنہ نظام ورتاوِ تہ کُس نظام چھہ کُنہِ زبانۍ ہندِ خاطرہ مناسب تہ موافق تہ موزون تہ لگہار، تمیک دارہ مدارہ تہِ چھہ شاعرسے پیٹھ۔ اگر لل دیدِ تہ شیخ العالمن کانہہ خاص نظام ورتوو، تمن باسیوو سے مناسب، موافق تہ لگہار تہ شاید اوسکھ تی برونہہ کنہِ، تہ اگر محمود گامی تہ رسول میرن کانہہ بیاکھ وزنہ نظام تہِ ورتوو تمن باسیوو سہ نظام تہِ موافق تہ لگہار۔

poet

لل دیدِ تہ شیخ العالمن کوتاہ انصاف کور تتھ وزنہ نظامس سیتۍ یُس تمو پننہِ شاعری منز ورتوو، تہِ زاننہ خاطرہ چھہ گۅڈہ سہ نظام سمجن ضروری۔ تمہِ نظامک چھہ نہ ثیقہ پاٹھۍ کٲنسہِ علم، لہذا چھہ اسہِ باسان زِ تہنزِ شاعری ہنز موزونیت چھیہ بے داغ۔ البتہ چھہِ اسۍ تمہِ وزنہ نظام چہ (یعنی فارسی عروض چہ) زانۍ کنۍ محمود گامی تہ رسول میر سندس ورتاوس کٹھہ کڈان یُس تمو پننہ شاعری ہندس اکس اہم حصس منز ورتوو۔ حقیقت چھیہ یہ زِ یم دۅشوے وزنہ نظام چھہِ کَنہ کہ لحاظہ کاشرِکہ خاطرہ ہوی موزون باسان۔ یہ چھہ بیاکھ سوال زِ یمن وزنہ نظامن ہند کُس کُس وزن (یا لے) چھہ کاشرس براہ۔ ممکن چھہ کانہہ وزن(لے) ما ہیکہِ نہ آسان، موافق تہ لگہار ٲستھ، یا موضوع، مقصد تہ لہجہ کہ لحاظہ ما ہیکہِ اکھ وزن (لے) زیادہ مناسب تہ لگہار ٲستھ۔ مثلا یوت تام لل دیدِ تہ شیخ العالم سندِ وزنہ نظامک تعلق چھہ، تمو چھہ تمام شاعری منز صرف اکوے آہنگ ورتوومت یس زن واریاہ حدس تام محدود تہ یک سطحی چھہ۔ شاید اوس یہنزِ شاعری ہنزِ نوعیژ کنۍ یی مناسب۔ لہذا چھہ نہ یہنزِ شاعری منز آہنگک سہ تنوع یُس حبہ خوتونہِ، صوفی شاعرن یا محمود گامی تہ رسول میر سنزِ شاعری منز میلان چھہ۔

اسۍ چھہِ نہ یہ تہِ ؤنتھ ہیکان زِ لل دیدِ تہ شیخ العالم سند وزنہ نظام تہ حبہ خوتونہ ہند وزنہ نظام چھا اکوے کِنہ الگ الگ۔ اکوے وزنہ نظام یُس اسۍ آسانی سان پہچٲنتھ ہیکان چھہِ سہ گوو فارسی وزنہ نظام ۔ امہ الگ یہ کینژھا چھہ تتھ چھہِ اسۍ کُنہِ حجتہ ورٲے پانے کاشر وزنہ نظام ونان۔ اگر اسۍ تجزیاتی نظرِ اتھ وزنہ نظامس وون دمو اسۍ وچھو زِ فارسی وزنہ نظامہ برونہہ چھہ سانہِ تمام تر شاعری منز ہیجلۍ نظام ورتاونہ آمت۔ اتھ ونوا اسۍ کاشر وزنہ نظام کِنہ بیاکھ اکھ وزنہ نظام یُس دنیا چین باقی زبانن منز تہِ رایج چھہ تہ کاشرِ زبانۍ تہ براہ اوس؟  

اسۍ چھہِ یژھے حجتہ زبانۍ متعلق تہِ قایم کران۔ اگر پرون چھہ، سہ گوو پنن تہ اگر نوو چھہ سہ گوو وۅپر۔ سنسکرتی کاشر (مثلا لل دیدِ ہندۍ واکھ) گوو  پنن کاشر تہ فارسی آمیز کاشر (مثلا رسول میرنۍ غزل) گوو وۅپر۔  یتھے پاٹھۍ چھہ ازکل اسۍ  تتھ زبانۍ کاشرچ آلودہ شکل تصور کران یۅس اردو آمیز چھیہ۔

سۅے چھیہ زندہ زبان تہ زندہ ادبی روایت یتھ منز  اثرات پانس منز جذب کرنچ صلاحیت آسہِ۔ یہ تبدیلی چھیہ نہ کانسہِ نفرہ یا جمٲژ ہندِ طرفہ کنہِ منصوبس تحت سپدان بلکہ چھیہ یہ اجتماعی سطحس پیٹھ وارہ وارہ شکل رٹان۔

من ندانم فاعلاتن فاعلات

عروض چھہ آہنگ چہ ضابطہ بندی ہند ناو۔ یہ ضابطہ بندی چھیہ پریتھ عروضس منز، خاص کر منظم عروضن منز یمن منز عربی فارسی عروض شامل چھہ۔ یہ چھہ پوز زِ نمونہ وزن (مثلا مفاعلن فعلاتن مفاعلن فعلن) چھہِ مشینی مگر زبانۍ ہندۍ یم متحرک تہ زندہ لفظ یمن نمونن پیٹھ گنڈنہ یوان چھہِ، تم چھہِ امہِ بنیادی آہنگ علاوہ پنن تہِ اکھ زندہ لسانی آہنگ تھاوان یتھ منز لہجہ تہ معنیک تہِ برابر دخل آسان چھہ۔ مطلب یہ زِ مفاعلن فعلاتن مفاعلن فعلن وزن اگرچہ مشینی چھہ اتھ پیٹھ وننہ آمتۍ غزل گژھن نہ مشینی آسنۍ تکیازِ میکانیکی آہنگ کنے ٲستھ تہِ گژھن نہ تم اکی لسانی تہ معنوی آہنگکۍ آسنۍ۔ اگر یُتھ صورت حال برونہہ کن ییہِ سۅ چھیہ لازما شاعر سنز کمزوری، یۅس خاص کر تکرار یا تقلیدک نتیجہ آسان چھہ۔ مثلا اتھ وزنس پیٹھ وننہ آمتۍ کاملنۍ غزل گژھن باقی شاعرن ہندین غزلن نش تہنزِ مخصوص زبانۍ کنۍ اکۍ سے عروضی نمونس پیٹھ ٲستھ تہِ لسانی آہنگ کہ لحاظہ مختلف آسنۍ۔ مثالی وچھن ترایہ کنۍ گژھن اتھ وزنس پیٹھ کاملنۍ ونۍ متۍ غزل تہِ اکھ اکس نش مختلف لسانی آہنگ ہیتھ آسنۍ۔ یہ نکتہ کرون بنمیو ترییو غزلو سیتۍ واضح ۔ اکھ غزل چھہ امین کاملن تہ بیاکھ رفیق رازن تہ بیاکھ شفیع شوقن۔ 

سہ وق سہ رٲژ پہر ییلۍ جگر وہاں آسی
بدن یہ ماز چھنتھ کرنز ہیو مۅژاں آسی
یہ لر تہ کانہِ لگاں کیل ہۅ لر تہ اڈۍ جہ فنا
تہِ پوشہ پان پنن بسترس سناں آسی
(امین کامل)

یِتھے چھہِ باگہ یواں کس مژر تہ خاموشی
سراں چھہ زندہ زوے کُس قبر تہ خاموشی
ژۅپارۍ زنتہ یہ چونے نظارہ بییہ نہ کہنی
ژۅپارۍ زنتہ یہ میانی نظر تہ خاموشی
(رفیق راز)

گژھن تہ اوس تمس گوو گژھتھ سہ آو نہ زانہہ
سیٹھا زمانہ گژھتھ آوہ آو دراو نہ زانہہ
لبن زٔلس چھہ ژشاں مول اندرہ باچھہِ کلا
ہنیوو گٹہِ منزے وۅگہ ووبۍ پھبیاو نہ زانہہ
(شفیع شوق)

یمن ترین غزلن ہند لسانی آہنگ چھہ نہ اکۍ سے مشینی وزنس پیٹھ ٲستھ تہِ کنے۔ یمن غزلن ہند انفرادی لسانی آہنگ بناونس منز ییتہِ یہندس مخصوص لفظیاتس، لفظن تہ تمن ہنزن آوازن ہندس دروبستس تہ مخصوص لہجس دخل چھہ تتہِ چھہ کنہِ حدس تام اتھ منز ردیف قافیہ تہِ مدد گار سپدان۔ امہِ علاوہ وچھو شوق سندین شعرن منز واقعاتی فعلن ہند ورتاو تہ اتھ مقابلہ رفیق راز نین شعرن منز واقعاتی فعلن نش احتراز، تہ کامل سندین شعرن منز شرطیہ فعل۔ یم سٲری لسانی پہلو چھہِ شعرک مخصوص آہنگ تعمیر کرنس منز مدد کران۔ وۅنۍ وچھون کاملنے بیاکھ غزل یس اتھۍ مفاعلن فعلاتن مفاعلن فعلن کس وزنس پیٹھ وننہ چھہ آمت:

یہ نار کیتھ چھہ الہی شہر شہر چھہ دزاں
عقل گمژ چھیہ دہے دہ اگر مگر چھہ دزاں
دزاں چھہِ بام پیواں ژینۍ ہیواں الاو کٹھین
گرس گرس چھیہ پلاں ژھٹھ نفر نفر چھہ دزاں

امہِ غزلک لسانی آہنگ چھہ یک دم کاملنہِ پتمہِ غزلہ نش مختلف تہ یتھے پاٹھۍ راز تہ شوق نہِ غزلہ نش تہِ۔ نکتہ چھہ یہ زِ وزنچ مشینی نوعیت (یۅس پریتھ قسمہ کہ عروضچ بنیاد چھیہ) چھیہ نہ یتھین غزلن برونہہ کنہِ کانہہ معنی تھاوان۔ یتھین غزلن منز چھہِ مشینی وزنہ بجایہ یمن غزلن ہنز لفظیات، آوازن ہنز دروبست، معنیاتی فضا تہ لہجک آہنگ پرن والۍ سندس ذہنس آوراوان۔ مگر ییلہِ کانہہ شاعر یتھین غزلن ہنز محض تقلید کرنہِ بیہان چھہ، عروض کہ مشینی نوعیتک احساس پیدہ گژھن چھہ لازمی۔ یہ احساس چھہ تیلہِ تہِ سپدان ییلہِ اسۍ رسالن منز اکی لسانی آہنگکۍ تہ لہجکۍ غزل صفحہ پتہ صفحہ وچھان چھہِ۔ یہ احساس چھہ نہ عربی فارسی عروض سے سیتۍ مخصوص بلکہ ہیکہِ یہ کنہِ تہِ عروضس منز ممکن ٲستھ۔ اتھ چھہ نہ صرف عروض کس ورتاوس سیتۍ رشتہ بلکہ لفظیاتس تہ لہجس سیتۍ تہِ۔ مثالہِ پاٹھۍ نمون اسۍ کاملن بنم غزل یس فاعلاتن مفاعلن فعلن کس وزنس پیٹھ چھہ:

نندرِ اندر نندر خراب تہِ کر
با سکوں روز اضطراب تہِ کر
سونچہ سودرکۍ ملر تلکھ ہمراہ
شیچھ یہ باوی دلک حباب تہِ کر 

اتھۍ غزلس پیٹھ ییلہِ راہی ہیو شاعر پنن غزل نہ صرف وزنہ کنۍ تہ قافیہ کنۍ بلکہ لہجہ کنۍ تہِ تقلید کٔرتھ ونان چھہ، یک دم چھہ تکرارک احساس گژھان۔ اگر اتھ آہنگس ساری شاعر یتھے پاٹھۍ پتہ لگن یۅہے احساس گژھہِ عروض کس مشینی احساسس منز تبدیل۔ وچھوکھ راہینۍ شعر:

سودرہ تارس تراں سراب تہِ سر
ٹورۍ اسناہ کراں گلاب تہِ ہر
چانہِ جسمچ سبز سپار پٔرم
میانہِ روحک کرہن عذاب تہِ زر 

نہ صرف چھہ اتھ منز کاملنہِ غزلہ کہ بنیادی لہجک آہنگ برقرار تھاونہ آمت بلکہ چھہ قافیہ تہِ برقرار تھاونہ آمت۔ اتھ غزلس منز چھہ کاملنہِ بییہِ اکہ غزلک ول تہِ ورتاونہ آمت۔ یعنی دوگن قافیہ۔ وچھون سہ غزل تہِ۔

چشمے تلکھ اضطراب ہاوکھ
دم دتھ تہِ کوتاہ حباب تھاوکھ
ماگس اندر تے امار برادی
ژٹۍ ژٹۍ حریرس گلاب چھاوکھ 

میانہِ پیٹھمہِ بحثک مطلب چھہ یہ زِ جان شاعر سندس اتھس منز چھہ نہ عروضک مشینی پاس نظری یوان۔ سہ چھہ پننہِ لہجہ تہ لفظیات چہ انفرادیژ تہ تحرک سیتۍ عروضک سہ پاسے نظرن دور کران۔ کامل، راز تہ شوق سندین غزلن منز چھہ نہ وزنہ کس مشینی نمونس منز کانہہ انحراف کرنہ آمت۔ تمہِ وارے چھہ یمن تریشونی غزلن منز آہنگک تنوع میلان۔ شاعری ہندِ آہنگک تنوع ہیکہِ لسانی انفرادیژ تہ لسانی تنوع علاوہ زحافن ہندِ ذریعہ یا عروضی انحرافو سیتۍ تہِ پیدہ کرنہ یتھ۔ عربی فارسی عروضس منز چھہِ آہنگ زیٹھین ژھۅٹین ہیجلین ہنزِ اکہ خاص ترتیبہِ سیتۍ پیدہ کرنہ یا گنڈنہ یوان۔ لہذا یمن ہنز یہ ترتیب قایم تھاونۍ چھیہ امہِ عروضچ اولین ضرورت۔ تمن عروضن منز ییتہِ عروضچ (آہنگ پیدہ کرنچ) بنیاد ژھۅٹین زیٹھین ہیجلین ہندس ترتیبس پیٹھ چھیہ نہ، تمن منز اگر ہیجلۍ اورہ یور تہِ گژھن کانہہ فرق پییہ نہ۔ مگر یتھ عروضس منز زیٹھین ژھۅٹین ہیجلین ہنز خاص ترتیب ورتاونہ یوان آسہِ، سۅ برقرار تھاونۍ چھیہ ضروری۔ البتہ اکہِ خاص ترتیبہِ سیتۍ پیدہ کرنہ آمت آہنگ برقرار تھٲوتھ رکھہِ ڈلنس چھہِ زحافہ ورتاو ونان۔ یعنی کینژن جاین چھہ تنوع پیدہ کرنہ کہ غرضہ ترتیبہ منز تبدیلی کرنک اجازت۔ پریتھ کانہہ شاعر چھہ نہ آہنگن ہند یوت ماہر آسان زِ سہ کرِ نوۍ نوۍ زحافہ ایجاد۔ اوے چھہِ پریتھ بحرس تہ وزنس عروضی کتابن منز کینژن مخصوص زحافن ہنز نشاندہی وتھ ہاونہ خاطرہ کرنہ آمژ تاکہ مجبوریو، مقصدو علاوہ ییہِ مختلف زبانن ہندِ آہنگک تہِ خیال تھاونہ۔ زحافہ ورتاوہ سیتۍ چھہِ نہ صرف اکہ وزنہ پیٹھہ نوۍ وزن بناونہ یوان بلکہ چھہ اکۍ سے وزنس منز آہنگک تنوع تہِ پیدہ کرنہ یوان۔ امہِ قسمک زحافہ ورتاو چھہِ نہ سانۍ شاعر عروض نہ زاننہ کنۍ کٔرتھ ہیکان۔ یمن زحافہ تبدیلین ہند اجازت چھہ زیادہ تر عروض تہ ضربس تام محدود تاکہ وزنک کلہم آہنگ روزِ برقرار۔ مگر کینژن وزنن منز ہیکہِ امہ قسمچ تبدیلی باقی ارکانن منز تہِ سپدتھ تہ آہنگس پییہ نہ تنوع علاوہ کانہہ فرق۔ مثلا کاملن یہ شعر:

ڈیر چھی سخنن گمتۍ نیر تہ بیہہ آبس منز
فاعلاتن فاعلاتن فعلاتن فعلن
معنہ حرفن چھہ ہراں تیزاں چھیہ تیہہ آبس منز
فاعلاتن فعلاتن فاعلاتن فعلن

وچھو اتھ منز کتھہ پاٹھۍ چھہِ فاعلاتن تہ فعلاتن (بہ تحریک عین) آزادی سان اکھ اکہ سیتۍ بدلاونہ آمتۍ۔ امہ تبدیلی سیتۍ یودوے دۅن مصرعن ہندس آہنگس منز تنوع پیدہ گومت چھہ مگر کنہِ قسمک اختلاف یا بد آہنگی چھیہ نہ پیدہ گمژ۔ ضرورت چھیہ یہ زِ نہ صرف ین جایز زحافہ کھلہ پاٹھۍ ورتاونہ بلکہ گژھن تتھۍ انحراف تہِ کرنہ ینۍ یمن ہند اجازت روایتی عروضی اصول چھہ نہ دوان مگر یم یا تہ زبانۍ ہندِ مخصوص آہنگہ کنۍ یا کنہِ معنوی مجبوری تہ تنوع کہ غرضہ کنۍ مستحسن آسن۔ یژھہ تبدیلی کرنہ خاطرہ چھیہ دۅشونی عروضس تہ زبانۍ ہندس آہنگس پیٹھ نظر آسنۍ ضروری۔ شاید چھہ یتھنے انحرافن مدنظر "کاشر شاعری تہ وزنک صورت حال” مقالک مصنف ونان:

’’عربی فارسی عروضہ کس محض مشینی ظاہرس آویزہ روزنس چھہ نتیجہ نیران زِ اسۍ چھہِ بعضے رتین کیو بڈین شاعرن ہندۍ کینہہ شعر وچھتھ پریشان ہوۍ گژھان زِ تمن کُس تُل کرو یا میژ ہیمو؟‘‘ (ص ۵۳)

امہِ اقتباسہ پتے چھہ سہ کینژن شعرن ہنزہ مثالہ دوان یمن منز رسول میرن یہ شعر تہِ چھہ۔

شہمارۍ زلفو نال وولہم رود افسانے
وۅنۍ ونتہ کم افسانہ پرے بال مرایو

اگر یہ مفعول مفاعیل مفاعیل فعولن وزنس پیٹھ نمون، یہ چھہ نہ مشینی طور پورہ وتران بلکہ چھہ کینژن جاین پھٹان۔ مگر اتھ منز چھیہ نہ پھٹنہ باوجود کانہہ بد آہنگی محسوس سپدان۔ یمیک وجہ اکھ الگ بحث چھہ تہ ییتہِ نس ونو اسۍ زِ یہ شعر چھہ یتھ کتھہِ کن خوب اشارہ کران زِ رکھہِ ڈلن یا زحافہ ورتاون یا ایجاد کرن کتھہ پاٹھۍ ہیکہِ آہنگ کہ لحاظہ مستحسن ٲستھ۔ شعر پھٹنہ باوجود چھہ نہ آہنگ مجروح گژھان۔ کانہہ لفظ ہیکہِ نہ اورہ یور ڈلتھ۔ کانہہ تصحیح چھیہ نہ ممکن۔ یہ شعر چھہ لفظن ہنزِ چستی تہ بندشہِ ہنز بہترین مثال پیش کران۔ اتھ برعکس نیون راہی ین یہ شعر:

نہ ابتدا نہ پریتھنپا نہ انتہا باسی
وزکھ اگر ٹھینوہ روس زانہہ میہ ونۍ زِ کیا باسی

یمن دۅشونی مصرعن منز چھہ نہ وزنس منز کانہہ انحراف کرنہ آمت تہ نہ چھہ کانہہ زحافہ ورتاونہ آمت۔ مگر وزنہ کنۍ دۅشوے مصرعہ مشینی طور برابر ٲستھ تہِ ہیکون نہ گۅڈنیک مصرعہ دویمس مصرعس ہم آہنگ مٲنتھ۔ بلکہ چھہ دویم مصرعہ کنہِ حدس تام بد آہنگ، تکیازِ اتھ منز چھیہ گۅڈنکس مصرعس مقابلہ لفظن ہنز بھرمار۔ دویم وجہ یہ زِ گۅڈنکہِ مصرعک آہنگ قایم تھاونہ خاطرہ چھہ دویم مصرعہ سیٹھا وُژھہِ تہ تیز رفتاری سان پرُن پیوان ییلہ زن شعر امہِ جلدی ہند کانہہ معنوی مطالبہ چھہ نہ کران بلکہ چھہ یہ مصرعہ کنہِ تھکہ وراے پشہ پیٹھہ شین والنس یا بیگارۍ نکھہ والنس برابر۔ راہی نہِ امی غزلک بیاکھ شعر تہِ وچھون:

بہ چھس نہ ونہِ تہِ سۅ کنۍ شیچھ تسنز ہیکاں مۅلوتھ
ژہ کیا کرکھ اگر ابلیس خیر خواہ باسی

اتھ شعرس منز تہِ چھہ گۅڈنیک مصرعہ مشینی طور وزنس برابر ٲستھ دویمہِ مصرعہ کہ آہنگہ نش زیٹھان۔ یم مصرعہ تہِ چھہِ نہ مکمل طور ہم آہنگ۔ راہینۍ یم شعر چھہِ وزن مشینی طور ورتاونک بیاکھ پہلو پیش کران۔ یعنی شعرک لسانی آہنگ اوک طرف ترٲوتھ، وزنہ برابری کرنۍ۔ یمہِ قسمچ خالص وزنہ برابری یمن شعرن منز میلان چھیہ سۅ چھیہ نہ لسانی آہنگک رت نمونہ پیش کران۔ ممکن چھہ یہ آسہِ راہی سنز شعوری کوشش مگر یہ ہیکہِ اظہارس یعنی لفظ وبیانس پیٹھ دسترس نہ آسنک نتیجہ تہِ ٲستھ۔ یوت تام نہ شاعرس یہ دسترس حاصل سپدِ توت تام چھہ سہ عروض کہ جبرکۍ بداد دوان۔ یمہِ ساتہ مولانا رومی ونان چھہ : شعر می گویم بہ از قند و نبات/من ندانم فاعلاتن فاعلات سہ چھہ اتھۍ مشینی مزازس کن اشارہ کران۔ مولانا چھہ نہ عروضکۍ بداد دوان یا امہِ کہ جبرچ کتھ کران بلکہ چھہ سہ یہ ونان زِ بہ چھس قندہ تہ نباتکۍ پاٹھۍ میٹھۍ شعر ونان یعنی پر آہنگ شعر۔ سہ چھہ نہ یم میٹھۍ شعر عروض نیبر نیرتھ یا عروض کین اصولن تجاوز کٔرتھ ونان بلکہ چھہ مولاناہن عربی فارسی عروض پریتھ پابندی سان ورتومت۔ پابندی سانے اوت نہ بلکہ جایز زحافہ ورتٲوتھ تنوع سان تہِ۔ تسند مقصد چھہ یہ زِ سہ چھہ نہ فاعلاتن فاعلاتنچ مشینی ضابطہ بندی یا وزنہ برابری نظرِ تل تھٲوتھ شعر ونان۔ یعنی سہ چھہ نہ زبردستی کٔرتھ لفظن منز وزنہ برابری کران۔ اگر تہِ کرنہ ییہِ تیلہ گژھن بد آہنگ شعر موزون یمن ہنز مثال اسہِ راہی سندین پیٹھمین شعرن منز وچھ۔ "من ندانم” گوو نہ "بہ زانہ نہ”۔ سہ گوو لفظی معنی، مگر یہ چھہ شعر۔ مولانا اوس وارہ کارہ عروض زانان تہ ورتاوان۔ امیک مطلب گوو سہ چھہ لفظن ہندس میچھرس یعنی لسانی آہنگس اہمیت دوان، فاعلاتن فاعلات کس ژھرس مشینی گردانس نہ۔ راہینۍ شعر اگر وزنہ کس مشینی گردانس پیٹھ پورہ وتران چھہِ، تاہم چھہِ نہ تم زبانۍ تہ آہنگک میچھر پیدہ کٔرتھ ہیکان یمچ کتھ مولانا پیٹھمس شعرس منز کران چھہ۔

اکھ پرانۍ چٹھیا ٲس

letter

تژھ تٍر یواں ٲس زِ رتھ شٹھہے رگن منز
اکھ پرانۍ چٹھیا ٲس ہتین دارِ مٔرم راتھ

یہ چھہ مظفر عازم سند اکھ زبان زد عام شعر۔

سیٹھا کم شعر چھہِ زبان زد عام گژھان۔ اکثر چھہِ امہ مۅکھہ یاد تھاونہ یوان یا روزان زِ تم چھہ اکس بییس موقعس پیٹھ بکار یوان۔ زبان زد عام گژھنک وجہ چھہ عموما شعری حسن کم تہ اکار بکار ینچ قابلیت زیادہ آسان۔ مثلا یہ شعر۔
یاد ماضی عذاب ہے یارب
چھین لے مجھ سے حافظہ میرا

یہ شعر چھہ ضرب المثل بنیومت تکیازِ اتھ منز چھہ انسانی تجربک اکھ تیتھ پزر موجود یس اکثر اوقاتن پیٹھ سانہِ احساسچ ترجمانی کران چھہ۔مگر اتھ منز چھہ نہ خیالہ کہ ورتاوہ علاوہ بییہ کانہہ شعری حسن یا خوبی۔ خیالن ولگیتُن دین چھہ نہ یکسر شعری عملہِ نیبر تکیازِ امہ سیتۍ چھہ کُنہِ معمولی خیالس منز کانہہ غیرمعمولی یا بالکل نوو پہلو نیران یمہ کنۍ پرن والۍ سندس ذہنس منز تعجب، سوال، تجسس، تحیر ، بیترِ ہوۍ جذبہ پیدہ گژھان چھہِ۔ پیٹھمس شعرس منز چھہ سوال پیدہ گژھان زِ یہ شخص کیازِ چھہ پتھ کال چہ ژیتہ آوری سیتۍ یوت پریشان؟ اتھ شعرس چھہِ واریاہ معنی ممکن۔ متکلم سند تکلیف چھہ یا تہ اوہ مۅکھہ زِ تسند پتھ کال چھہ تسندس ازکالس برعکس (1) سیٹھا مارۍ موند اوسمت، نتہ چھہ (2) سیٹھا تکلیف دہ اوسمت یس نہ تس ونیک تام مشان چھہ۔ یتھے پاٹھۍ چھہِ عذاب، یارب تہ حافظہ ہوۍ لفظ معنی چہ باریکی منز اضافہ کران۔ شعرس منز یتھہ پاٹھۍ اکہ کھۅتہ زیادہ (تہ بعضےمتضاد) معنی پیدہ کرنۍ تہِ چھہ اکس حدس تام شعری حسن ماننہ یوان۔ اتھ شعرس چھہ بیاکھ پہلو یس فلسفس سیتی تعلق چھہ تھاوان۔ سہ گوو انسانی قوت حافظہ یمہ کنی انسانی تواریخ تہ سانی ترقی ممکن چھیہ۔ یہ تواریخ چھیہ انسانہ سند خاطرہ اکھ بوڈ عذاب تہ بنان۔ امکی سبق چھہ اسہ برونہہ کنہ۔ امہ کشادہ معنی کنی چھہ خدایس کن مخاطب گژھن اہمیت تھاوان۔ امہ خیال آرایی تہ کارآمدی ورٲے چھہ نہ اتھ شعرس منز بییہ کانہہ زبردست شعری حسن۔ اتھ مقابلہ چھہ مظفر عازم سند شعر محسوساتن ہند دنیا سٲنس ذہنس منز آباد کران۔

عازم سندس شعرس منز تہِ چھہ اردو شعرس رلوُن مگر برعکس خیال ۔ اظہار تہِ چھہ نہ اردو شعرکۍ پاٹھۍ سیدِ سیود بلکہ چھہ اکھ منظر اچھن برونہہ کنہِ واقع سپدان تہ تٍرِ ہند تہِ چھہ کم کاسہ احساس گژھان۔ شعرس منز چھہ لغوی تہ استعاراتی معنین ہند سنگم۔لغوی سطحس پیٹھ چھیہ شعرس منز وندہ کالچ تہ ناداری یا غفلتچ عکاسی۔کریٹھ راتھ۔ دارِ گول یلہ۔ تٍر۔ اخبار کاغذ تہِ نہ موجود۔ مجبوری۔ یہ چھہ اکھ عام ، ممکن تہ سطحی صورت حال ۔ اتھ منز چھہ ناسٹالجیا۔ استعاراتی سطحس پیٹھ چھہ یمنے عام چیزن منز علاوہ (تہ الگ) معنیچ دریافت سپدان۔ استعاراتی معنی چھہ نہ لغوی معنی یکۍ پاٹھۍ مقرر آسان۔ لہذا ہیکو اسۍ تٍرِ، دار، چٹھہِ واریاہ معنوی تعبیر کٔرتھ۔ یعنی تٍر ہیکہ اتھ شعرس منز نامساعد حالات یا اشکال تہِ، دٲر ہیکہ نظریہ یا زندگی ہند کانہہ تجربہ تہِ ٲستھ۔

شعرہ کین لفظن ییلہ اکہ اکہ سنان چھس، معنی چہ کٲژٲ باریکی چھیہ برونہہ کُن بوان۔ "اکھ پرانۍ چٹھیا” یا "دارِ مٔرم راتھ” یم لفظ کوتاہ چھہِ باوان۔ مثلا
اکھ: کُنی، غیر معین۔
پرانۍ: مشراونہ آمژ، شاید وقت بدلنس سٍتۍ بے مصرف، یا مۅلج ۔
چٹھیا: اکے، کتھہ تام پاٹھۍ پتھ کن روزمژ، اکھ بلا تعین خط۔
ٲس: پانے ٲس، شاید پیتھ، رژھراونہ ٲس نہ آمژ ، عدم دلچسپی۔
مٔرم: تکلیف دہ عمل، ناقدری، احساسہ روس۔
راتھ: مشکل وق، لاتعلقی۔

Image

نوٹ: مظفر عازم چھہ کاشرِ شاعری ہنز اکھ سنۍ تہ گنۍ آواز، یمو پنن سفر جدید کاشرِ ادبہ کین تھنگین لرِ لور شروع کور تہ تمن لرِ لور پٔکتھ نظم تہ غزل دۅشونی صنفن منز اظہارکۍ نوۍ نوۍ پڑاو پرٲوۍ۔ بہ چھس نہ فی الحال اتھ لایق زِ بہ کرہ یہنزِ "حرف ڈاے” تازہ شعرہ سۅمبرنہِ پیٹھ کانہہ تبصرہ، البتہ ونہ بہ زِ اتھ کتابہِ منز چھیہ بے مثال غزلو علاوہ ویتھ، الف،دم، زاڈیک پوش، سفراتھ ہشہ کامیاب ترین نظمہ تہِ شامل۔ یہند غزل چھہ شروع پیٹھے اکھ نون انہار ہیتھ اوسمت، یمچ مثال یہند بنم شعر چھہ یتھ پیٹھ میہ پیٹھم کینہہ لفظ نیب 27 منز شایع کرۍ۔ افسوس چھہ زِ سٲنس اکس بڈس نقادس آو نہ گنتی ہندین سانین شاعرن منز غزلہ کس سفرس منز عازم صٲب کُنہِ پڑاوس پیٹھ نظرِ۔ کشمیر یونیورسٹی ہندس غزلک فن سیمینار منز "کاشرِ غزلک سفر، کینہہ ننۍ پڑاو” کلیدی مقالس منز  پننہِ غزلہ خاطرہ اکہِ الگ مقامچ گنجایش کڈنہ خاطرہ چھہِ امۍ نقادن غزلکۍ شاعر پننہ آسایشہِ مطابق ترین درین منز باگراوۍ متۍ یمن منز شاد رمضان، عزیز حاجنی، مجروح رشید تہ برجناتھ بیتاب ہوۍ جونیر شاعر تہِ اکس پڑاوس پیٹھ  براحمان چھہِ، مگر مظفر عازم چھہ نہ تریشونی درین منز کنہِ نظرِ گژھان۔ یہ چھیہ افسوسچ کتھ۔

وادس منز گلریز رسالس متعلق اکھ لۅکٹ بحث

واد رسالس منز چھہ گلریز رسالس متعلق اکھ لۅکٹ بحث سپدمت، یمیک ذکر ضروری چھہ۔ عزیز حاجنی یس چھہ پروفیسر محی الدین حاجنی ین وونمت زِ "گلریز” رسالہ اوس تمی کوڈمت تہ پانس سیتۍ ٲسن مرزا عارف تہ امین کامل تھاوۍ متۍ۔ امہ کہ بند گژھنک وجہ اوس یمن دۅن درمیان نفہکۍ پونسہ باگراونک جھگڑہ، یتھ پروفیسر حاجنی ین فیصلہ کٔرتھ دژاو مگر یمو دریو مون نہ۔ یم کتھہ چھیہ عزیز حاجنی ین شیرازس منز چھپیمتس پننس اکس مضمونس منز ونہِ مژہ۔ تمیک اقتباس چھہ:

” گلریز رسالہ چھپییوو کاشرِ زبانۍ منز یہنزوے (مطلب پروفیسر محی الدین حاجنی سنزو) کوششو سیتۍ تہ توتام رود یہ باقاعدہ پاٹھۍ چھپان یوت تام یم (مطلب پروفیسر محی الدین حاجنی) اتھ سیتۍ وابستہ رودۍ۔ ۔۔ یہ رسالہ چلاونس منز ٲسۍ یمن مرزا غلام حسن بیگ عارف تہ امین کامل تہِ سیتۍ ۔۔۔ یہ رسالہ بند گژھنک اصلی وجہ اوس سہ فتنہ یُس کامل صابس تہ عارف صابس نفہک پونسہ بٲگراونس پیٹھ ووتھ۔ تہ یہ فتنہ انزراونہ خاطرہ دژاو میہ (مطلب پروفیسر محی الدین حاجنی) عاقلی فیصلہ زِ گلریز کہ آمدنی ہندۍ ہریمانہ پٲنسہ گژھن محض امہ رسالہ چہ ترقی خاطرہ تھاونہ ینۍ۔” (شیرازہ جنوری فروری 1988)

اتھ پیٹھ سوز کاملن وادس اکھ خط یس واد شمارہ 12 کس دویمس حصس منز چھپیوو۔ اتھ منز ٲسۍ کاملن حاجنی سند یہ بیان غلط ثابت کرنہ خاطرہ یم حقایق پیش کرۍ متۍ:

(1)  گلریزک گۅڈنیک شمارہ دراو نومبر 1952 ہس منز۔ اتھ چھہ بانی مرزا عارف تہ ترتیب امین کامل تہ پرنٹرپبلشر
محمد صدیق کبروی ٹاکارہ پاٹھۍ چھپتھ۔
(2) فروری 1953 ہس اندر ییلہ کامل امہ ادارہ نش الگ سپد (کامل آو ژکہ سبکدوش کرنہ)، مرزا عارفن بناوۍ محی الدین حاجنی تہ عبدالحق برق کامل سنزِ جایہ ترتیب کار۔
(3) اگر یہ رسالہ محی الدین حاجنی یُن اوس تہ امۍ مرزا عارف تہ امین کامل پانس سیتۍ رٹۍ متۍ ٲسۍ تم کتھہ پاٹھۍ ٲسۍ رسالک نفع بٲگران تہ محی الدین حاجنی اوسکھ فیصلہ دوان کٔرتھ۔

اوت تام اوس صحیح زِ عزیز حاجنی ین لیوکھ تہِ یہ تمۍ محی الدین حاجنی یس نش بوز، مگر کامل سند جواب پٔرتھ پزِ ہے تس اکس ادیب سندۍ پاٹھۍ یمن کتھن متعلق تحقیق کرُن، نزِ واپسی جوابس منز یہ لیکھن: "(کامل) چھہ کافی ادبی سفر طے کرنہ باوجود تہِ اپرِ کس حدس تام جبلت خود نمایی ہند شکار۔ یمہ کتھہ ونہِ میہ حاجنی صٲبن مگر کامل صٲب چھہِ دپان زِ یہ چھہ سراسر اپُز! خیر زبان درازی گوو نہ جان۔”

جبلت خود نمایی ہند کس نہ چھہ شکار؟ مگر گلریز رسالہ کین متعلقہ شمارن ہندۍ گۅڈہ ورق چھہ پیش تاکہ محی الدین حاجنی سنز غلط بیانی گژھہِ ننۍ تہ عزیز حاجنی یس گژھہِ احساس ز یژھہ کتھہ چھیہ نہ جذباتن بلکہ تحقیقک تقاضہ کران۔

gul1

یہ چھہ گۅڈنیک شمارہ، یتھ مرزا عارف بانی لیکھتھ چھہ، محی الدین حاجنی سند چھہ نہ کانہہ ناو نشانے، نہ اداریہس منز تہ نہ مندرجاتن منز۔

gul 2

یہ چھہ پٍنژم شمارہ۔ کامل دراو تریمہ شمارہ پتہ، مرزا عارفن رٹۍ محی الدین حاجنی تہ
عبدالحق برق پانس سیتۍ۔

Gul 3

تمہ پتہ 1955 ہس منز بند گژھتھ، آو 1961 منز دوبارہ کڈنہ، مرزا عارفن رٹۍ غلام نبی خیال تہ مرزا حبیب الحسن پانس سیتۍ۔

عزیز حاجنی صابا، وونۍ ما اوس گلریز رسالہ محی الدین حاجنی ین کوڈمت؟

غلام احمد مہجور سند اکھ "بیہ زو تہ بیہ کیف” غزل

واوہ صبحہ کہ یود ژہ واتکھ ملک امریکس اندر
لیک سکسس کونسلس منز حال سون ون سربسر
و ۅرہ مولا اوس اسہِ پانے بنیوومت خانہ دار
سانہِ رتہ سیتۍ گوو رچھان پننین تہ اسۍ رودۍ دربدر
اوس باپٲریاہ تمس مدتس، توے پوشس نہ کانہہ
اہرہ تمۍ سندِ سیتۍ ٲسۍ ویسران کم کم شیرِ نر
ہمتک ہول گونڈ لکو تم کاوہ آہنگر بنیۍ
ڈیرہ گنڈنووکھ کوڈکھ ییتہِ قصہ کورہس مختصر
یام ژول باپارۍ بب سون پست ہمت گوو سیٹھا
آے لاران سون گرہ ہمسایہ لوگکھ شور وشر
ویژ پنن ہیتھ راتھ کیت دراو لۅتہِ پاٹھۍ وۅرہ مول سون
اسۍ ژھنن ہونین تہ ژول ترٲون نہ اسہ کُن پوت نظر
بے کسی ہندۍ سانۍ آلو بوزۍ بالو سنگرو
آسمانن وود سیٹھا گوو نیک انسانن اثر
اسہِ بچاونہِ اکھ جماتھا آیہ لاران آسمانۍ
لتہ مۅنجہِ گیہ اسۍ سیٹھا دب لج گرس سٲنس اندر
نیبرہ اوس وتہ کون گومت اندرہ مۅکلیوو کارہ بار
بب تہِ ژول نب رود کٕھسہ نس، سانۍ حالتھ گیہ بتر
اکھ چھہ پاکستان ونان بیاکھا ونان ہندوستان
اسہ سپد فی الحال ڈاکستان یتھ ملکس زبر
بخشتن اسہِ تراوۍ تن ونۍ توکھ اسہِ کیت تی چھہ جان
اسۍ سنبالو گرہ پنن یم نیرۍ تن ساری نیبر
ملکہ منزہ کڈتوکھ یم داہ گار ٭اسہِ کیت تی چھہ جان
اسۍ کرو پانے حکومت دعوا یُتے اوس مختصر
دۅہ کشی گیہ وقت لوگ تاریخ گردانی سپنۍ
اسۍ چھہِ وۅنۍ زانان تۅہہ چھوہ نیتس اندر کھۅچر
غیرتس سٲنس کٔرو تہۍ کوت کالا امتحان
اسۍ مرو ، غیرس کھۅرن تل زانہہ تہِ نومراوو نہ سر

مہجور سند یہ نظم نما غزل چھہ کلچرل اکاڈمی ہندس کلیات مہجور کس (یتھ محمد یوسف ٹینگ ترتیب کار بنیومت چھہ) صفحہ نمبر 316-315 ہس پیٹھ درج۔ یہ کلیات چھہ زبانۍ ہنزن غلطین ہند پلندہ۔ یمن غلطین منز چھیہ زیادہ تر کٲتبن ہنزہ غلطی۔ کانہہ بٲتھ چھہ نہ یتھ منز   کانہہ نتہ کانہہ غلطی آسہِ نہ۔ شرمناک حدس تام کتابت چہ غلطی چھیہ ہاوان اتھ کتابہِ (تہ اکاڈمی ہنزن اکثر کتابن ہند تہِ چھہ یوہے حال) چھہ نہ کانسہِ پروف پورمت۔ یژھہ ہشہ اہم کتابہِ پروف نہ پرنہ کنۍ غلطین ہند ذمہ دار گژھہِ خۅد ترتیب کار ٹھہراونہ یُن۔ اگر ترتیب کارس کلیاتس منز شامل کلام بیی جمع کٔرتھ دیت، تمچ ترتیب تہِ ببی دژ، پروف تہِ بیی پور (اگر پزۍ کنۍ پورمت چھکھ)، پتہ کمیک ترتیب کار چھہ ٹینگ؟  صرف مقدمہ لیکھنہ سیتۍ ما بنیوو کانہہ ترتیب کار؟ کتابہ چھہ اندرمس ورقس پیٹھ لیکھتھ "ترتیب کار، حواشی تہ مقدمہ”۔ حواشی چھہِ نہ کنی۔ البتہ چھہ بس مقدمہ بچان۔ یتھ غزلس منز تہِ چھیہ کتابت چہ کژ غلطی۔ غزلس چھہ نہ تلہ کنہِ کانہہ تاریخ دتھ تہ نہ حاشیہ، حالانکہ یہ غزل چھہ "کۅنگ پوش” (جلد 1، شمارہ 2) رسالس منز 1950 ہس منز چھپیومت۔ گۅنگ پوشس منز چھہ نہ ہندوستان، پاکستان وول شعر درج۔

٭ ٹینگ چھہ بہمس شعرس منز "داہ گار” بدلہ "دانا” لفظ دوان۔ خبر یہ دانا کتہِ آو؟  اتھ شعرس منز چھہ نہ دانا لفظک کانہہ مطلبے، نہ معنی رنگۍ تہ نہ وزنہ رنگۍ۔ کۅنگ پوشس منز چھہ داہ گارے چھپیومت۔ رحمن راہی چھہ "کہوٹ” کتابہِ منز "داہ گار” بدلہ "دہ گیر” دوان (ص 183)۔ سہ تہِ چھہ نہ صحیح۔ داہ گار مطلب گوو دہ کرن وول، نقصان واتناون وول، ڈاس کرن وول۔ راہی چھہ یہ شعر نقل کٔرتھ اتھ متعلق لیکھان "سیٹھہے بیہ زو تہ بیہ کیف”۔ مگر یہ یمہ تنازعک بیانیہ چھہ، سہ چھہ از 60 وری گذرنہ پتہ تہِ زندہ تہ ساسہ بدین کاشرین تنبہ لاوان۔ متہ ٲسۍ تن اتھ منز کانہہ شعری کمال، اتھ منز ٲسۍ تن ژھۅژرے، مگر یہ چھہ کشیرِ ہندس تنازعس متعلق مہجور سند نقطہ نظر پیش کران تہ ژھوٹۍ پاٹھۍ اکھ تاریخی واقعہ بیان کران یس مہجور نہ قلمہ آسنہ کنۍ میانہ خاطرہ واریاہ اہمیت تھاوان چھہ۔ امۍ سے مہجورس متعلق چھہ راہی اکھ نظم "کنۍ کتھ” لیکھان یۅس "سیاہ رودہ جرین منز” کتابہ اندر شامل چھیہ۔ اگر تتھ نظمہِ اسۍ "بیہ زو تہ بیہ کیف” ونو نہ، مہجور سنزِ نظمہِ کیازِ ونو؟

"روت موکل” — زندگی ہنز وۅمید

anin_kamil
روت موکل ۔۔ امین کامل

کۅ کتھ ہیتھ آو شبنم راتھ شامس
قدم سوتۍ پاٹھۍ تروون پوشہ وارے
اژتھ پوشن کنن منز راتۍ راتس
اپز اوش رود ہاراں تولہ وارے
مٹنۍ گورا ملا زن خانقیشا
ونان اوسکھ چھہ دنیا دار فانی
فریبا بوڈ یتیک اسنا تہ عیشا
رِوانی یوت اژن نیرن رِوانی
اتھۍ اندر آفتابن تروو پرتو
اچھن گاشا اونن کوسن دلن مل
عناصرہ شبنمس ڈجہ تے کڈن دو
فنا گوو گاش ڈیشتھ روت موکل
ژھنس کھنگالہ پوشو مس ملوریو
کورس ژرِ پوپ شریو زن پوشہ ٹوریو

یہ چھیہ امین کامل سنز اکھ ابتدایی نظم یۅس 1953 ہس آس پاس وننہ آمژ چھیہ تہ تسنزِ "مس ملر” کتابہِ منز شامل چھیہ۔ امہِ نظمہِ ہند تعارف سپد میہ گۅڈنچہ لٹہِ پروفیسر جیالال کول سنزِ سٹڈیز ان کشمیری کتابہِ منز تسندِ انگریزی ترجمہ کہ ذریعہ یس امہِ نظمہِ ہند سیٹھا قابل ترجمہ چھہ۔ کول چھہ امہِ نظمہِ ہنز خصوصیت استعارک نویر ونان ۔ترقی پسند تحریکہِ یمن چیزن ہند ڈول ووے تمن منز ٲس پگہچ وۅمید تہِ۔ یہ نظم چھیہ ٹاکارہ پاٹھۍ ترقی پسندی ہندس اثرس تل وننہ آمژ، مگر زندگی ہنز وۅمید تہ تسلسل یُس امیک مرکزی خیال چھہ، چھیہ انسانی وجودس تہ ادبی اظہارن منز ہمیشہ موجود ٲسمژ۔

ترقی پسند تحریکہِ برونہہ ٲس یہ وۅمید مذہب تہ ثقافتی روایژن سیتۍ وابستہ۔ امہِ تحریکہِ کٔر یہ وۅمید سماجی برابری ہندس فلسفس سیتۍ وابستہ یتھ منز عوام تبدیلی ہند مرکز بنیوو۔ جدیدیتکۍ فلسفن کٔر یہ وۅمید کلاسیکل کین مذہبی تہ ثقافتی کیو ترقی پسندی کین سماجی تہ اجتماعی پہلوون برعکس انسانہ سندس انفرادی پہلووس سیتۍ وابستہ۔ ادیب سنز وۅمید تہِ بنییہ تخلیقی عملہِ ہنز وۅمید تہ یہ سپز وۅنۍ خۅد ادب پارس سیتۍ وابستہ۔ مگر وۅمید روز ہمیشہ ادبس پتہ کنہِ کارفرما تکیازِ وۅمید چھہ اکھ بنیادی انسانی جذبہ تہ امہِ کنۍ ین یہ تہ پژھہ ہشہ باقی نظمہ ہمیشہ پرنہ یم زندگی سیلیبریٹ کران چھیہ۔

زندگی ہنز موتس پیٹھ فتح تہ زندگی ہندس تسلسلس پیٹھ وننہ آمژ یہ نظم چھیہ سانیٹ فارمہ منز۔ شبنم شخصٲوتھ تہ کۅ کتھہِ ہند ایجنٹ بنٲوتھ پیش کرُن چھیہ یمہ نظمہِ ہنز اکھ خوبصورتی تہ نویر۔ شاعری چھیہ ہمیشہ معمولس تہ معمولی یس نیبر نیرنچ کوشش کران یۅس یمہِ نظمہِ ہندس استعارس منز ظاہر چھیہ۔

کامل سندۍ پیکر چھہِ نہ خالص نمایشی نوعیتکۍ، یم چھہ موضوع کہ لحاظہ معنی خیز آسان۔ یتھ نظمہِ منز چھہ پوشن ہندین کنن منز شبنمک اژن گورن تہ ملن ہندس خالص وعظانہ تہ عملہِ روس درسس کن اشارہ کران۔ اگر پوش مندر یا خانقاہ مانون، شبنم چھہ یمن اندر وعظ پرن وول گور یا ملہ۔ آفتاب چھہ استعاراتی طور روحانی معنی رٹان، تہ امیک کانہہ وعظ پرنہ ورٲے خالص پرتو سیتۍ دلن ہنز کدورت تہ مل دور کرن چھہ گورن تہ ملن ہندس وعظس مقابلہ اکھ عملی روحانی واقع۔ ملہ تہ گور چھہِ روحانی گٹس اندرے پریتھان۔ ظہورک آفتاب چھہ نہ اچھن تہ دلن گاشرٲوتھ یمن ہندِ خاطرہ کانہہ گنجایش تھاوان۔ یتھ نظمہِ چھہ ترقی پسندی کھوتہ زیادہ کامل سندس اعتقادی رحجانس سیتۍ واٹھ لگان۔

یہ نظم چھیہ صوتی طور تہِ آوازن ہند اکھ ہم آہنگ سلسلہ قایم کران۔ نظمہ منز دیو یمن آوازن کن خاص دھیان: /و/، /س/، /ش/، /ت/، /ر/ ، /ن/۔

__

نظمہِ ہنز معنوی تہہ داری سمجنہ خاطرہ چھہِ یم کینہہ نکتہ کارآمد

۔ جاے، پوشہ وٲر
۔ کردار: شبنم (روت موکل)، پوش، آفتاب، پوشہ ٹورۍ
۔ وقت: شام/راتھ، یعنی اکہ دۅہہ کس اندس تہ دویمہ دۅہہ کس آغازس درمیان وقفہ، یتھ درمیان وقت معطل چھہ سپدان تہ امہِ کس تسلسلس چھہ ٹکھ لگان
۔ پوشہ وٲر دنیاہک، زندگی ہند استعارہ
۔ آفتاب: حقیقت، اچھن گاش انان، شک کاسان، دلن مل دور کران
۔ روانی یوت اژن نیرُن روانی۔ اتھ مقابلہ کھنگالہ تہ ژرِ پوپ۔ اکھ ڈرامایی صورت حال۔ دۅن حقیقتن درمیان اکھ تصادم۔
– گۅڈنکین ژۅن مصرعن منز چھہ پوشہ وارِ ہند فطری (نیچرل) دنیا پیش یوان کرنہ۔ امہ پتہ یم ژور مصرعہ یوان چھہِ تمن منز چھہ مثال دِتھ انسانی دنیا متعارف کرنہ یوان، تہ امہ پتہ یتہ والین ژۅن مصرعن منز بییہ وسعت دتھ فطری دنیا (شریو تہ پوشہ ٹوریو تتھہ ٹاٹھۍ انۍ متۍ زِ یہ ونن چھہ مشکل زِ ژرِ پوپ کورا شریو کنہ پوشہ ٹوریو۔)واپس اننہ یوان تہ ٲخری دۅن مصرعن منز چھہ فطری دنیاہس تہ انسانی دنیاہس میل کرنہ آمت (شرۍ تہ پوش)۔

__

مس ملر کہ وقتہ اوس کامل باقی شاعرن ہندۍ پاٹھۍ اقبال سندس اثرس تل۔  یتھ نظمہِ پتہ کنہِ گژھہِ علامہ اقبال سنز یہ نظم پرنۍ۔  کامل سنز نظم چھیہ امہ کے آزاد ترجمہ باسان، مگر کامل سنزِ نظمہِ منز چھہ اتھ خیالس موضوعی تہ تکنیکی طور ہریر واضح۔

زندگی

شبی زار نالید ابرِ بہار
کایں زندگی گریۂ پیہم است
درخشید برقِ سبک سیر و گفت
خطا کردۂٖ، خندۂ یک دم است
ندانم بہ گلشن کہ برد ایں خبر
سخن ہا میانِ گل و شبنم است

__

محمد یوسف ٹینگ چھہ غلام نبی فراق سنزِ "صدا سمندر” کتابہِ ہندس دیباچس منز اکس جایہ ونان زِ فراقن لیچھہ "دسلابہ چہ کینہہ اولین نظمہ۔ مثلا یتھ مجموعس منز موجود لوکٹ نظم ‘صبح’ یۅسہ 1957 منز تھنہ پیمژ چھیہ۔ یہ چھیہ سانیٹ کس فارمس منز تہ شاید اوس امہ برونہہ صرف دیناناتھ نادمن یتھ ہیو چیز کاشرۍ پاٹھۍ لیوکھمت۔” گوڈنی نادم سندس سانیٹس ‘یتھ ہیو چیز’ ونن چھہ عجیبے باسان۔ دویم کتھ چھیہ کاشرِ ادبہ کس امس بالغ نظر نقادس گژھ مۅچھہ برابر لیکھنہ آمتس کاشرس ادبس پیٹھ میانہِ کھوتہ ژر نظر آسنۍ۔ کامل سند پیٹھم سانیٹ چھہ فراق سنز ‘صبح’ نظمہِ برونہہ 4 وری وننہ آمت تہ 1955 منز شایع گمژِ ‘مس ملر’ کتابہِ منز شامل۔ اہم کتھ چھیہ نہ یہ زِ کاملن چھہ فراقس برونہہ سانیٹ وونمت بلکہ یہ زِ فراقن چھیہ کاملن ‘روت موکل’ سانیٹ پرۍ تھے تمی طرزہ تہ مفہومہ پننۍ نظم ‘صبح’ ونۍ مژ۔ رات تمہِ پتہ آفتاب پھۅلن، شبنم، پوشہِ ٹورۍ یم ساری چیز چھہِ فراق نہِ نظمہِ منز آمتۍ۔ یہ حیران کن ہشر چھہ نہ اتفاقی۔ یمن دۅن نظمن ہند تقابلی مطالعہ چھہ نہ مقصد لیکن یہ کتھ چھیہ ضروری زِ فراق سندس سانیٹس منز چھہ ژیلہ ژیلہ کرن واجنہِ آرایشی تہ روایتی پیکر تراشی سیتۍ صبحک منظر پیش کرنہ آمت تہ ٲخری شعرس منز یہ منظر ڈیشون پیدہ کٔرتھ تسندین امارن یتھے شوبہِ دار صبح پھۅلنک طمع ظاہر کرنہ آمت۔ یہ چھیہ فراق سنز ابتدایی شاعری یتھ پیٹھ کیٹس تہ ارداہمہ صدی ہندین انگریزی رومانٹک شاعرن ہند اثر اوس۔ یہ اثر چھہ ‘صبح’ نظمہ منز تہِ ظاہر۔

غیرطرفدار ہمعصر تنقید چھا ممکن؟

کٲنسہِ ادیب سند صحیح مقام مشخص کرُن چھہ واریاہس حدس تام تسنزِ حیاتی منز ناممکن، خاص کر کشیرِ ہشہِ لۅکچہ جایہ ییتہِ اکھ اکس کالہ پگاہ بُتھ دین چھہ آسان۔ یوت تام تسند عہدہ، اثرو رسوخ، لحاظہ، تسندۍ دوست، دشمن تس اندۍ پکھۍ روزن، تسندِ ادبی کارنامہ کھۅتہ روزِ شخصی معاملن ہند عمل دخل زیادہ۔ تس پتہ تہِ ہیکہِ نہ توت تام صحیح مقام مشخص سپدتھ یوت تام تسندۍ شاگرد تہ احسان مند تہ شخص پرست اندۍ پکھۍ آسن۔ گویا صحیح مقام پراونس چھہ اکس ادیبس خاص کر یژھن لۅکچن جاین زہ تریہ پیہ پرارُن پیوان۔

 ذاتی تعلقاتن منز ٹیچھر یِتھ کور محمد یوسف ٹینگن پٔنژہ ترہ ؤری برونہہ یہ فیصلہ زِ سہ ہیہِ نہ کُنہِ جایہ امین کامل سند ناوے، سواے تیلہ ییلہ تمس پنن بوس لوژراون آسہِ۔ امہ فیصلہ کنۍ سپز ہمعصر شاعرن پیٹھ ٹینگ سنز راے ہمیشہ خاطرہ مشکوک، تکیازِ امۍ سندس تنقیدی میزانس چھہ وۅنۍ سنگ، خاص کر ییلہ زن اسہِ پتاہ چھیہ زِ ٹینگ سند تنقید چھہ قدر شناسی تہ تجزیس منز کم تہ ادبی مرتبہ بازی، توایخ سازی تہ فیصلہ صادر کرنس منز زیادہ دلچسپی تھاوان۔ تمۍ سندِ تنقیدچ زبان، تعلی تہ جذباتی شان چھہِ اتھ صحافتی تہ سیاسی رنگ دوان۔ صحیح تنقید چھہ فیصلہ صادر کرنہ بجایہ تتھ قدر شناسی منز یقین تھاوان یۅس تشریح تہ تجزیس پیٹھ مبنی چھیہ آسان۔

بیاکھ مسلہ چھہ یہ زِ کاشرس ادبس منز یُسے پرن وول چھہ سُے چھہ شاعر تہ یُسے شاعر چھہ سے چھہ نقاد تہِ۔ (شاعر سنزِ جایہ ہیکِو افسانہ نگار تہِ پٔرتھ!) اتھ صورت حالس منز چھہ غیرجانبدار تنقید کہِ پریتھُنک امکان سیٹھا کم آسان۔ یہ کتھہ پاٹھۍ چھہ ممکن زِ رحمن راہی سند تنقید آسہِ غیرجانبدار تکیازِ ییلہ سہ مثلا ہمعصر شاعری پیٹھ مضمون لیکھان چھہ تمہِ ساتہ چھیہ تسنز پننۍ شاعری تہِ براہ راست یا بالواسطہ یا اشارتا زیربحث آسان! یا ییلہ رفیق راز یس پانہ غزلہ کے شاعر چھہ ہمعصر غزلس پیٹھ مضمون لیکھان چھہ، باقی اہم شاعرن متعلق کٲژا صحیح تہ خالص ہیکہِ تسنز راے ٲستھ؟ شفیع شوق کوتاہ احسان فراموش بٔنتھ لیکھہِ ہمعصر ادبی صورت حالس متعلق پنن تنقید؟

اتھ صورت حالس منز چھیہ اکثر  چالاکی تہ ژۅیہ پریتھان تہ ٹڈ کرنکۍ موقعہ تلاش کرنہ یوان۔

کاشر رسالہ واد (قسط 4 )

وادکۍ اداریہ چھہ گواہ زِ  1980 اندۍ پکھۍ یۅس پُے ادبس کن آے، تمن نش ٲسۍ واریاہ سوال، پتمیو پُیو ہندِ کھوتہ زیادہ سوال، مگر سوالے ٲتۍ۔ تم ہیکۍ نہ سوالو برونہہ پٔکتھ۔ تمو کرۍ صرف سوال، تمو ژھٲنڈۍ نہ تمن ہندۍ جواب۔ پرانین پُین نش یتھی تتھی سہی ٲسۍ جواب۔ سوال اگر کمے ٲسۍ مگر جوابن ہنز تشفی تہِ ٲسکھ حاصل۔ واد کین اداریہن منز ٲسۍ زیادہ تر سوال تہ صرف سوال کرنہ یوان۔

گۅڈنکس شمارس منز آو وننہ زِ ادیب چھہ سماجک ساروے کھوتہ زیادہ حساس انگ، مگر یس "زنا بالجبر” اسہِ سیتۍ سپدان چھہ تمچ گواہی چھہ نہ سون کانہہ ادیب دوان تکیازِ تمن بچارن نہ چھہ کُنہ سماجی ڈھانچک کانہہ تارپود پتہ تہ نہ چھکھ انسان نوِ سرہ سرنک تہ گرنک کانہہ ولولہ۔ مزید چھہ یہ وننہ آمت زِ "ادب چھہ اکہ سماجچ اندرونی خود آگہی، تہ کانہہ نفر ہیکہِ نہ توت تام ادیب بٔنتھ یوت تام نہ تسند پنن شعور بالغ آسہِ۔ یوت تام نہ سہ انسانی حالژ سنیومت آسہِ تہ امہ سیتۍ حیران تہ پریشان گومت آسہِ۔ یوت تام نہ سہ کُنہِ تبدیلی تہ شاید بہتری ہند طلب گار آسہِ۔ ادیبس گژھہِ انسان سندین وجودی تہ ماورایی کھرین ہند زبردست احساس آسن۔ یمنے کھرین ہنز ورگہ وۅکھنے چھیہ ادیب سنز کٲم مگر یہ وۅکھنے گژھہِ تمہ اندازہ کرنہ ینۍ یُتھ زن یمن کھرین ہند شعور پرن والین تہِ شدت سان سپدِ تہ شاید یم کھرۍ کاسنک کانہہ جذبہ تہِ وۅتلہِ تہندین دلن اندر۔”

دویمس شمارس منز چھہ امہ سماجی شعور پتہ تاریخی شعورچ کتھ تُلنہ آمژ تہ یہ وننہ آمت زِ جمٲژ یا فرد  ہیکہِ نہ تاریخ زاننہ ورٲے پننۍ ذاتھ پہچٲنتھ،  پنن وجود رژھرٲوتھ تہ ارتقا پرٲوتھ۔ سارنے متن تہ تہذیبن اتھ معاملس منز پتھ زٲنتھ چھہ وننہ آمت زِ اسلام کہ ابتدایی عروجک اکھ بوڈ وجہ چھہ اسلامک زبردست تہ سرون تاریخی شعور تہ سیتی چھہ یہ تہِ وننہ آمت ز مارکسس  اوس تاریخک شدید ترین احساس تہ کانہہ تہِ بامقصد ہمکال دانشور ہیکہِ نہ مارکسس نظرانداز کٔرتھ۔

تریمس شمارس منز چھہ زبانۍ ہند شعور چکاونہ آمت۔ زبانۍ ہند تنقیدی شعور چھہ انسانی علوم تہ تاریخ زاننہ خاطرہ اہم قرار دنہ آمت۔ وننہ چھہ آمت زِ سماجک  با رعایت تہ با اثر طبقہ چھہ پننۍ زبان اصل تہ معیاری زبان ویندنک کچل بہہ مون کران تہ پننین مفادن قومی حیثیت بخشان۔ لہذا چھیہ زبانۍ ہنز حد بندیہ پھٹراونچ سفارش کرنہ آمژ۔

ژورم شمارہ چھہ شاعری متعلق سوالہ ہا پرژھان زِ شاعری کُس چیز چھہ شاعری بناوان؟ کیا شاعری پرکھاونۍ چھا ممکن؟ شاعری چھہِ کٲتیاہ پہلو۔ ہیتی، فنی، موضوعاتی، اسلوبیاتی، نظریاتی تہ جمالیاتی پہلو۔ سوال چھہ کرنہ آمت زِ یمو منزہ کس پہلو چھہ شاعری، شاعری بناوان؟

پٍنژمس شمارس منز چھہ "آتش چنار” کہ حوالہ پرژھنہ آمت ییلہ شیخ عبداللہ 1975 منز دِلہِ الحاق کٔرتھ آو تہ ریاستس منز 1953 ہچ قانونی حیثیت بحال کرنک وعدہ کرنہ آو، کاشر یس 53 ہس منز سکولن منز اوس تراونہ آمت، کیازِ آو مشراونہ؟ ہندی تہ اردو کیازِ سپدۍ اسہِ پیٹھ مسلط؟

شیمس شمارس منز چھیہ پرن والین ہنزِ متواتر شکایژ جواب دنچ کوشش کرنہ آمژ ز واد چھہ اکثر غیر شایستہ لفظ ورتاوان یس غیر صحت مند چھہ۔ ادارہ چھہ صحت مند صحافتس کھوکھرۍ مفروضہ تہ نظریاتی بلف ؤنتھ رد کران۔ وننہ چھہ آمت زِ زبان شایستہ تہ غیر شایستہ زمرن منز بٲگراونۍ چھہ نہ کانہہ لسانی اصول۔

ستمس شمارس منز چھہِ افسانس متعلق تقریبا تمے سوال پرژھنہ آمتۍ یم شاعری پیٹھ ژورمس شمارس منز پرزھنہ آمتۍ ٲسۍ۔ افسانہ کتھ ونو؟ یہ پرکھاون چھا ممکن؟ اکھ خاص کتھ  چھیہ یہ وننہ آمژ  زِ شاعری منز چھہ نہ کال نظرِ گژھان۔ شاعری ہند وق چھہ روحانی ییلہ زن افسانہ فزیکل وقتک پابند چھہ۔

ٲٹھمس شمارس منز چھہ وننہ آمت زِ کانہہ تہِ چیز مۅلونہ خاطرہ چھیہ اکھ کہوٹ آسنۍ لازمی۔ یم معیار چھہِ نہ کالہ پگاہ بنان بلکہ چھہِ زیٹھہِ انسانی تجربکۍ پیداوار۔ کہوچن ہند تعلق چھہ کُنہِ جمٲژ یا فردہ سندس نظریہ حیاتس سیتۍ۔ اکہ سیتۍ ییہِ بیاکھ پہچاننہ۔ سوال چھہ پرژھنہ آمت زِ اکہ زمانہ چہ کہوچہ ہیکنا بییس زمانس منز لگہ ہار ٲستھ؟ اگر اسۍ حقیقت ہمیشہ بدلونۍ مانون، کہوچہ تہِ بدلن۔ اگر نہ، تیلہِ روزن معیار پریتھ زمانس منز لگہ ہار۔ وننہ چھہ آمت ز از چھیہ نہ اسہِ پرانین کہوچن پیٹھ پژھ روزمژ مگر نوِ کہوچہ تہِ چھہِ نہ بنٲوتھ ہیکان۔

نوۍ مس شمارس چھہِ زہ حصہ۔ اکھ حصہ چھہ مہجور سنزِ صد سالہ برسی پیٹھ اکاڈمی ہندس سیمنارس متعلق۔ اتھ سیمنارس منز شامل کینژن کھۅکھرین دانشورن ہندِ بہانہ چھہ وننہ آمت زِ "سون ناخواندہ دانشور طبقہ چھہ ہونین ہندِ کھوتہ بدتر۔ ہونس گژھہِ اڈج ٹکنہ باپتھ آسنۍ پتہ چھیس نہ کھسنۍ۔” دویمس حصس منز چھہِ ونان زِ سانہِ شاعری ہند بوڈ حصہ چھہ صوفی شاعری یمۍ لکہ شاعری ہند لب لہجہ ورتوو۔ مگر سیتی چھہ وننہ آمت ز "لکہ شاعری (چھہ نہ)  پنن کانہہ لب و لہجہ۔” امہ علاوہ چھیہ عروضس تہ کاشرن لین متعلق تمے کتھہ پننہِ فہمہ موجب وننہ آمژہ یم امین کاملن مہجور سیمنارس منز پننس مقالس منز ونہِ مژہ آسہ۔ کامل چھہ خطس منز لیکھان ” مہجورنس ہتۍ مس وہروادس پیٹھ پور میہ اکھ مقالہ۔ کٲنسہ شاعرس عروضی بنیٲز  پیٹھ سام ہینچ ٲس یہ گۅڈنچ کوشش۔ اتھ اندر اوس اکھ کاشر لیہ نظام ترتیب دنک تجویز پیش کرنہ آمت۔  دۅشوے کتھہ (چھو) حوالہ ورٲے کھتاوِ مژہ۔”

دہمس شمارس منز چھیہ کشیرِ ہندس اعتقادی ارتقاہس مختصر سام ہینہ آمژ۔ بدھ مت کتھہ پاٹھۍ آو ختم کرنہ۔ تمہ پتہ کتھہ پاٹھۍ پھانپھلیوو شیومت یمیک مشہور فلسفی ابھنو گپت اوس۔ وننہ چھہ آمت ” شیو متک مانن چھہ زِ کاینات چھہ آفاقی ژیتہ شکتی ہند ظہور۔ یہے شکتی چھیہ پریتھ رنگس منز جلوہ گر تہ یمۍ انسانن یہ ژیتر پروو، سہ پراوِ نجاتھ۔” امہ پتہ چھہ اسلام یوان یمہ پتہ کشیرِ واریاہ سیاسی، سماجی تہ تاریخی گٲیلہ گے تہ نتیجہ دراو زِ کشیرِ ہنز فلسفیانہ روایت مۅیہ۔ مگر یمو عظیم روایتو چھہ سانین لکہ روایژن پیٹھ سرون اثر تروومت۔ لل دیدِ پیٹھ شیومت تہ شیخ العالمس پیٹھ اسلامک تہ شیو تہ بودھ متک تہِ اثر چھہِ ٹاکارہ۔ صوفی شاعری پیٹھ تہِ چھہ یمن عظیم روایژن ہند اثر نون تہ ٹاکارہ۔ سوال چھہ پرژھنہ آمت زِ موجودہ دورچہ کاشرِ شاعری منز تہِ چھا یمہ روایژ درینٹھۍ گژھان کنہ نہ؟

کہمس شمارس منز چھہ وننہ آمت ” کانہہ تہِ قوم چھہ نہ مذہب کس بنیادس پیٹھ پھبتھ ہیوکمت۔ بدیشی مذہب چھہ نہ قومن ہنز تہذیبی ساخت تہ جبلی عمل بدلٲوتھ ہیکان یعنی مذہبی تبدیلی چھیہ نہ تہذیبی تبدیلی بٔنتھ ہیکان۔ بدیشی مذہب چھہ اکی تہذیب تہ تمدن کین مختلف طبقن منز بینیر پیدہ کٔرتھ یمن پانوانۍ ژوناوان تہ فسادات کرناوان۔ کاشر چھہ پننہِ تہذیب تہ تمدن کنۍ اکھ قوم تہ کاشر س چھیہ پننۍ اکھ تہذیبی تہ تمدنی شناخت تہ مذہبی تہ سیاسی گٲیلو کنۍ گے کاشرۍ سنز تہذیبی شناخت مسخ تہ کاشر آو طبقن تہ ورگن منز بٲگرنہ۔ طبقن تہ ورگن ہنز زبان گیہ بیون۔ ” ٲخرس پیٹھ چھہ تجویز پیش کرنہ آمت "کاشرِ تہذیبی وحدتچ بازیافت چھیہ تیلی ممکن ییلہ زن اسۍ ساری اکھ اکۍ سندین معاملاتن منز شریک سپدو۔”

بہم شمارہ چھہ فلسفہ چکاوان۔ ونان چھہِ  زِ انسانی روحک یس روایتی تصور اسہِ نش چھہ سہ چھہ یہ زِ "روح چھہ اکھ لافانی شے، یتھ پیٹھ نہ وقتک کانہہ اثر چھہ۔ یۅہے روح پرزناونک تلقین چھہِ سانۍ صوفی شاعر کران، مگر زبان چھیہ اکھ تاریخی شے، لہذا اگر اسۍ انسانی شخصیتک یہ تصور پاننٲوتھ کُنہِ فن پارس سام ہیمو تہ کتھہ پاٹھۍ؟ ادبی تنقیدس منز چھیہ تاریخ مخالف نہجہِ سیٹھا سرنۍ مول۔ آفاقی ادب تہ آفاقی جمالیات ہوۍ تصور چھہِ امی نہجہ ہندۍ پیداوار۔ اسہِ پییہ پننین تنقیدی پرمانن نوِ سرہ سام ہینۍ۔ یہ کتھ چھیہ لازمی ز ادب مۅلونہ برونہہ گژھہِ یہ کتھ واضح آسنۍ زِ انسانس متعلق کیا چھہ سون تصور۔” امہ شمارہ کس دویمس حصس منز چھہ مہجور صد سالہ سیمنارس متعلق وننہ آمت زِ مہجور سندس فنس پیٹھ کتھ کرنہ برونہہ پزِ سرہ کرن تسند نظریہ کیا چھہ اوسمت؟ نظریچ اہمیت تہ کارکردگی کیا چھیہ ادبس منز؟ مہجور سندس جمالیاتس، بوطیقا، لسانی اہمیژ پیٹھ چھہِ سوال ہا کٔرتھ وننہ آمت زِ یمن مسلن پیٹھ آو نہ اکاڈمی ہندس سیمنارس منز کانہہ مقالہ پرنہ۔ "سیمنارس منز آو فقط درامن کرنہ۔”

تروٲہم شمارہ چھہ ادبچ تہ تنقیدچ فرق یتھہ پاٹھۍ سمجاوان تہ کاشرس تنقیدس متعلق حکم دوان "ادب یودوے زن کانہہ ادراکی علم چھہ نہ تہ یودوے زن اتھ عقلہِ تہ منظقس سیتۍ زیادہ واٹھ چھہ نہ مگر ادبی تنقید چھہ اکھ منطقی تہ ادراکی علم۔ ادبس متعلق مختلف سوالن نظریاتی سۅتھرس پیٹھ جواب ژھارنس منز چھہِ اسۍ عقلی تہ منطقی دلیلن کٲم ہیوان تہ تنقید بامعنی تہ با مقصد بناونہ باپتھ چھہ لازمی زِ تنقید نگارس گژھہِ عقلی تہ منطقی صلاحیژو واش آسن کوڈمت۔ تمۍ سندۍ تجربات تہ مشاہدات گژھن کافی وسیع آسنۍ تہ تس گژھہِ علمک تہِ اتھہ روٹ آسن۔ بییہ گژھہِ تس انسانی لاشعور سمجنچ صلاحیت آسنۍ۔ بدقسمتی چھیہ یہ زِ ییلہ اسۍ کاشرس ادبی تنقیدس سام چھہِ ہیوان، اسہِ چھہ نہ یُتھ کانہہ تنقید نگار درینٹھۍ گژھان۔”

ژۅدٲہمس شمارس منز چھیہ ساہتیہ اکاڈمی تہ ریاستی کلچرل اکاڈمی تنقیدک ہدف بناونہ آمژہ۔ ساہتیہ اکاڈمی متعلق چھہ وننہ آمت "کاشرس منز یمہ تہِ کتابہ ساہتیہ اکاڈمی ہندِ طرفہ شایع سپزہ، ترجمہ یا تخلیق رنگۍ، (تم) چھیہ حیرانگی ہندس حدس تام زبانۍ رنگۍ غلط تہ موادہ رنگۍ ناموزون۔ ساہتیہ اکاڈمی چھیہ کاشرِ تہذیب تہ تمدنچ بیخ کڈنہ باپتھ زبردست کوشش کران۔ منافق تہ ناہنجار لوکن ہنزہ کتابہ شایع کٔرتھ چھیہ اکاڈمی کاشرکۍ مول پراٹان۔ وننہ چھہ یوان زِ ساہتیہ اکاڈمی منز چھیہ ژونٹھۍ پیٹہِ، ماچھ بوتلہ، شال تہ ڈونۍ زبردست پاٹھۍ چلان تہ ‘ڈونۍ ادبس’ چھہ پوچھر یوان دنہ۔ ساہتیہ اکاڈمی منز چھہِ وۅنۍ کاشرِ زبانۍ ہنز نمایندگی ریاستی کلچرل اکاڈمی ہندۍ ملازم کران تہ کاشرین کتابن یم جہالت پھیلاوان چھیہ، چھہِ انعامہ دنہ یوان۔” ریاستی کلچرل اکاڈمی متعلق چھہِ ونان ” اکاڈمی یہ کینژھا ادبی مجلسہ، ادبی محفلہ تہ سیمنار کرناونس منز کران چھیہ، سہ چھہ حوصلہ بخش مگر یمہ کتابہ تہ رسالہ اکاڈمی ہندِ طرفہ شایع سپدان چھہِ، تم چھہِ مویوس کن۔ اکاڈمی چھیہ کاشر ڈکشنری شایع کرمژ، ڈکشنری سیتۍ وابستہ ادیبن ہنزِ علمیتک اندازہ چھہ ڈکشنری پٔرتھ سپدان۔ ڈکشنری سیتۍ وابستہ لوکھ چھہِ ناخواندہ تہ جاہل۔ یمن نہ چھہ کاشر صرف و نحو معلوم تہ نہ چھہ یمن ڈکشنری ترتیب دنچ صلاحیت موجود۔” یہ اوس دراصل ڈکشنری پیٹھ میانین مضمونن ہند زور یمو منزہ اکھ اتھۍ ژۅداہمس شمارس منز چھپیوو۔