واوک احساس

cropped-muneebpic.jpg

واوک احساس
منیب الرحمن





واو چھہ کلین ژپنجہ متان
تہند شور چھا سانین کنن تام واتان
اگر ووت تہِ سۅ چھیہ خبر
یوت تام نہ سٲنس جسمس پیٹھ
شونگۍ متین والن سہ تھود تلہِ
تہ اسہِ شہ رگہِ نزدیک
پننہِ آسنک احساس دیہِ
توت تام نہ چھہ واو
نہ چھہِ کلۍ
تہ نہ شور!

ہم کو شاعر نہ کہو

cropped-muneebpic1.jpg
ہم کو شاعر نہ کہو
منیب الرحمن



سطحِ دریا پہ تہہ آب کو پینے کی ہوس
بلبلے کو بھی ہے گرداب کو پینے کی ہوس

ہم کو تالاب کا تالاب ملا، پی ڈالا
پھر بھی باقی رہی مہتاب کو پینے کی ہوس

رنگ آنکھوں میں بھی لاتا ہے مگر اف تیری
جگرِ سوختہ خونناب کو پینے کی ہوس

دیکھ لے آئی ہے صحرائے شبِ ظلمت میں
چشمِ دنیا یہ تری خواب کو پینے کی ہوس

ہم کو شاعر نہ کہو یار منیب الرحمن
کبھی ہوسکتی ہے غرقاب کو پینے کی ہوس

قدیم شعری ہیت

book

واکھ یا شروک چھہ ژورن مصرعن ہنز اکھ قدیم شعری ہیت یۅس نہ صرف سانہِ کشیرِ منز بلکہ واریاہن قومن مثلا ہندوستان، افغانستان، چین، ایران بیترِ ملکن منز ورتاونہ یوان ٲس۔

یہ چھیہ معیاری ادبی ہیت، یہ چھیہ نہ لکہ ادبچ ہیت۔ لکہ ادبچ ہیت چھیہ وژن۔ شیخ العالم چھہ ژ‎ۅن مصرعن ہنز یہ ہیت لل دیدِ مقابلہ سیٹھا پابندی سان ورتاوان۔ امس چھیہ تمام شروکین منز مصرعن ہنز اکھ گنڈتھ قافیہ ترتیب، یۅس اسۍ /اب ا ب/ سیتۍ پرکٹ کٔرتھ ہیکون۔ لل دیدِ ہندس واکھس منز چھیہ قافیہ بندی ہنز ترتیب بدلان۔ امہ رنگہ ییتہ لل واکھن منز تنوع میلان چھہ، شیخہ شروکین منز چھہ ہشر۔ مگر شیخ العالم چھہ قافیہ بندی بدلہ شروکۍ چہ ہیٔژ منز تنوعچ وتھ کڈان۔ سہ چھہ شروکہ کین عمومی طور گنڈتھ ژورن مصرعن منز اتی دۅن تہ اتی ژۅن مصرعن ہند ہریر کٔرتھ اتھ ترین تہ ژۅن شعرن تام واتناوان مگر قافیہ بندی منز چھہ نہ کانہہ تبدیلی انان۔ گۅڈنیک چھہ تریمس، دویم چھہ ژورمس، پانژم چھہ ستمس تہ شییم چھہ ٲٹھمس مصرعس سیتۍ برابر قافیہ بند۔

امین کامل چھہ نور نامس منز ونان "یہ چھہ ہاوان زِ حضرت شیخس تام چھیہ اتھ صنفس اندر تبدیلی سپزمژ۔” مگر یہ چھیہ نہ صنفچ کانہہ ارتقایی تبدیلی بلکہ اتھ ہیتس وسعت دنہ خاطرہ شیخ العالم سند پنن اکھ تجربہ۔ اگر یہ عام پاٹھۍ ہیتچ ارتقایی تبدیلی آسہِ ہے تیلہِ آسہِ ہے یہ شیخ العالمس سیتۍ سیتۍ تہندین ژاٹن ہندس ورتاوس منز۔ یا تس برونہہ تہِ، یُس نہ ثابت ہیکہِ گژھتھ۔

بیاکھ تجربہ یُس شیخ العالمس نش میلان چھہ، سہ چھہ لکہ شاعری ہنز ہیت وژن ورتاونک تجربہ۔ امین کامل چھہ یمن”مسلسل شروکۍ” ؤنتھ وژنکۍ "گۅڈنکۍ نمونہ” قرار دوان۔ مگر میہ چھہ باسان وژن آسہِ ہے امہ وقتہ تہِ لکہ ادبس منز رایج۔ شیخ العام چھہ اتھ پننہ ادبی شاعری منز ورتاونک تجربہ کران۔

کُس گوو توت

th_Charari Shareif

کُس گوو توت تہ کمیو ڈیوٹھے
توت نتھ وٲتتھ کیتۍ گیہ پتھ
یمۍ یوت پنن پانا ژیوٹھے
تمۍ تیژ لٔبے لیٹھے وتھ

شیخ العالم

شیخہ شروکین پیٹھ کتھ کران چھہ سٲری پشہ پیٹھہ زن شین والان۔ یہ چھہ یمن تیوت سہل تہ برونہہ کنیک معاملہ باسان زِ کُنہ لفظس پیٹھ غور کرنہ خاطرہ چھہِ نہ کٲنسہ ہندۍ قدم رکان۔

تور کُس ووت تہ سہ کمۍ وچھ۔ یہ چھہ اتھ پیٹھہ کنیک معنی۔ توت یعنی تور، تتھ جایہ، تتھ طرفس۔ مگر توت گوو تتُن تہِ، تیزُن تہِ، سخت گرم گژھن تہِ۔ توت فقیر، توت موت! یہ معنی ہیکون نہ نظر انداز کٔرتھ۔ توت گژھن گوو بخار کھسُن تہِ۔ امہ لحاظہ کٔرو دویمس مصرعس پیٹھ غور۔ "کیتۍ گیہ پتھ”۔ پتھ گژھن گوو بیمار سنز حالت خراب گژھنۍ، ابتر گژھنۍ۔ پتھ گژھن گوو وتی ڈۅکن تہِ۔ منزلس نہ واتن۔ ہمت ہارنۍ۔

ڈینٹھن گوو نظرِ یُن، اچھن منز یُن۔ کمیو ڈیونٹھے؟ کس آو سہ بوزنہ؟ آفتابہ ہیکیا کانہہ وچھتھ؟ آفتاب ہیکیا کانسہِ اچھن منز یِتھ؟ آفتاب کس تژرس ہیکہِ کانہہ توتے ژٲلتھ۔ تریمس مصرعس منز چھیہ پان ژیٹنچ کتھ۔ پان ژیٹن گوو پننس پانس ژنجہِ دنہِ، پنن سینہ دگن، مار دین۔ پان کُس ژیٹہِ ؟ سے یُس تتیومت آسہِ ، یُس سیٹھا تیزیومت آسہِ۔ یُس پان ژیٹہِ سہ تتہِ، یُس تتیومت آسہِ سہ ژیٹہِ پان۔ پان ژیٹن گوو نہ پان ژٹن۔ یہ چھیہ نہ محنتچ یا ریاضتچ کتھ۔ یہ چھیہ پنن پان گالنچ کتھ۔ پنن پان، پنن نفس یوتاہ گالنہ، مارنہ ییہِ، تیوتاہ ژھۅٹہِ وتھ۔ ژھوٹ وتھ تتھ خاص مقامس تام۔

زیٹھ وتھ آسنہ کنۍ تہِ ہیکہِ کانہہ پتھ گژھتھ۔

Die unto Me so I can live in thee! — Jesus

شیخ العالم چھہ اکھ ا کھ لفظ تولۍ تولۍ ورتاوان تتھہ پاٹھۍ زن یم لفظ امی بنٲومتۍ چھہِ۔

اتھ شروکس منز چھہ /ت/ آوازِ ہند سیٹھا غلبہ، مخولہ چھہ نہ، ژۅن مصرعن منز چھہ 13 / ت/ ذات الہی کہ آفتابک تژر تہ تیزر باوان۔

کُنیرے بوزکھ

shk

کُنیرے بوزکھ کُنہِ نو روزکھ
امۍ کنرن کوتاہ دیت جلاو
عقل تہ فکر تور کوت سوزکھ
کمۍ مالہِ چیتھ ہیوک سہ دریاو

شیخ العالم

کُنیر گوو توحید۔ خدایہ سنز ذات چھیہ لاشریک۔ کُنۍ۔ بوزُن گوو کنہِ چیزس کن تھاون۔ کنہِ چیزس کن دھیان دین۔ کانہہ چیز سمجھن تہ زانن۔ بوزن گوو حساب لگاون تہِ۔ روزُن گوو کنہِ جایہ ٹھہرن، قرار کرن۔ "کُنیرے بوزکھ” چھہ شرطیہ فقرہ۔ اکھ فرض کرنہ آمت صورت حال۔ اگر تہِ سپدِ، اگر خدایہ سنز ذات سمجھنۍ ہیکھ، زاننچ کوشش کرکھ، کنہِ روزکھ نہ۔ کنہِ نہ روزن گوو وحشت طاری گژھن تہ کنہِ جایہ نہ قرار لبُن۔ بیاکھ معنی گوس پنن آسُنے راوُن۔ جلاو دین گوو نپہ نپہ کرن، چمکن۔ نون نیرُن۔ یعنی امہ کنرہ منزہ کوتاہ، لانہایت دراو نون۔ عقل چھیہ انسان سنز زان حاصل کرنچ صلاحیت یمچ بنیاد پانژن حیسن پیٹھ چھیہ تہ فکر چھیہ امہ صلاحتچ عمل۔ "توت کوت سوزکھ” گوو عقلہ ہند توت نہ واتن، رسایی نہ حاصل گژھنۍ۔ وتی ژھۅکن۔ تریم مصرعک عقل واتہِ نہ توت تام چھہ دۅشونی کتھن پیٹھ لاگو۔ عقل ہییکہِ نہ کنرس تام وٲتتھ تہ توت تام تہِ نہ یہ امۍ کنرن بود چھہ کورمت، لانہایت جلاو۔ لفظ "تور ” چھہ قابل غور۔ تور کوت سوزکھ یعنی کانہہ وسیلہ چھہ نہ تہ بییہ چھیہ نہ سۅ کانہہ مخصوص جاے یوت کانہہ چیز سوزنہ ییہِ۔ بوزکھ لفظہ کہ تعلقہ ونو زِ کنرس حساب لگاون چھہ ناممکن۔ اسۍ ہیکو نہ امہ کس جلاوس تہِ حساب لٲگتھ۔ خدا (توحید) سمجھن تہ زانن چھہ نہ انسانہ سندِ خاطرہ ممکن۔ ٲخری مصرعہ چھہ اتھ مابعدالطبیاتی خیالس اکہ مثالہِ سیتۍ محبتہ سان (مالہِ) سمجھاونچ کوشش کران۔ یہ چھہ ضرب المثل۔ دریاو چینک چھہ نہ سوالے۔ پیٹھہ کُس دریاو؟ "سہ دریاو” یُس سانہِ دریاوہ تہِ زیادے دریاو چھہ تکیازِ دریاو چھہ لگارتار، ژھینہ روس، ہمیشہ وسوُن۔ یُس چیۍ چیۍ تہِ ختم گژھہِ نہ ۔ سہ روزِ تتۍ تیتھے۔ سہ چھہ یہ دپۍ زِ تہِ ازلی ابدی۔

یہ شروک چھہ توحید وجودی یس کن اشارہ۔ یمہ مطابق خدایہ سندِ مفرد ذاتہ تہ وجودہ ورٲے بییہ کانہہ/کینہہ موجود چھہ نہ۔

کُنرس وون میہ خدایہ سنز ذات، اسۍ ہیکو اتھ صرف کُنیر تہِ ؤنتھ یا ونوس "کینہہ نہ”۔

اتھ شروکس منز چھہ /ک/ آوازِ ہند تکرار۔ گۅڈنکین دۅن مصرعن منز چھہ/ن/ آوازِ ہند تہِ تکرار یُس قابل توجہ چھہ۔ یم زہ آوازہ رٔلتھ چھہ لفظ "کُن” تہِ بنان۔ یم آوازہ چھیہ کُنرہ چہ تہِ کلیدی آوازہ۔

غزل کنہ وژن؟

mahjoor

نیب 21 منز تُل رفیق رازن مہجور سندِ اکہِ غزلہ کس وزنس متعلق سوال۔ غزل چھہ کلیاتس منز یتھہ پاٹھۍ درج:

للونۍ میہ چھم چانۍ لولہ چھۅکھ مۅکھ ہاوتو مارہ متیو
ینہ چانہِ ژلنم غم تہ دۅکھ رۅخ ہاوتو مارہ متیو
دل میون گۅڈہ برمرووتھن پتہ کیازِ داوس لوگتھن
دعدہ آدنکۍ لولکۍ سخن یاد پاوتو مارہ متیو
درایہ سازہ منزہ آوازِ ناز بوزتھ پتھر پییہ عشقہ باز
بے جان امہِ سازک یہ راز ننۍ راوتو مارہ متیو
چون رنگ و روپ چون خط و خال ڈیشتھ ژلاں غم تے ملال
ظلمکۍ تہ ستمن ہندۍ خیال مشراوتو مارہ متیو
ییلہ مس چھہِ چاوان عاشقس پر تہ پان ہوے باسان تس
ژہ تہِ پننہ اتھہ ستۍ لولہ مس میہ تہِ چاوتو مارہ متیو
دل میون لولہ نارس اندر یژ صاف گوو زٲلتھ کھۅچر
وۅنۍ لولہ بازارس اندر مۅلناوتو مارہ متیو
چھکھ زندگی بخشاں کمن یہ تہِ تازہ کرتن میون من
بے حیس گومت شونگمت چمن وزناوتو مارہ متیو
ییلہ عقلہِ کور لولس جواب ووتھ شور عالم گوو خراب
وزناوۍ متہِ فتنک یہ خواب بییہ ساوتو مارہ متیو
پوشہ نولہ سندین آلون گل پانہ گلۍ چھِکھ آلون
مہجور سنزہ کتھہ کیا لوَن پرکھاوتو مارہ متیو

راز چھہ ونان زِ مہجورن یتھ وزنس پیٹھ یہ غزل وونمت چھہ، یہ چھہ نہ تتھ پیٹھ پورہ وتران۔ ٲخرس پیٹھ چھہ راز امہِ غزلہ کس قافیس پیٹھ تہِ اعتراض کران ۔ ونان چھہ: "مطلع تل چھہ صاف ننان زِ غزلک قافیہ چھہ (رۅخ) (مۅکھ) بیترِ تہ ردیف (ہاوتو مارہ متیو) مقرر کرنہ آمت۔مگر امچ پابندی چھیہ نہ مطلع ورٲے کنہِ تہِ شعرس منز نباونہ آمژ۔”

بہ کرہ راز نین دۅشونی نکتن پیٹھ کتھ۔گۅڈہ تلون قافیچ کتھ۔

سانۍ وژن لیکھن والۍ شاعر ٲسۍ پننس کلامس غزلے ونان۔ امیک ثبوت چھہِ تم قلمی نسخہ یمن منز وژنن پیٹھ تہِ غزل عنوان چھہ دتھ۔ امہ علاوہ ٲسۍ سٲنۍ شاعر پانس غزل خوانے ونان۔ مثلا وچھوکھ یم شعر:

حاجنک اسد غزل خانے    صاحب دل نے ونانے
تمۍ پان زولے اتھ عشقہ نارس   سلورِ منز لارس تہ لولو
(اسد پرے)

رازہ ہونزے فیض ازالی چھہ تو  وازہ محمود کیا یہ غزل خانہ سون
(وازہ محمود)

باہوشن چھس باواں سیر   بے ہوشن دواں الماس تیر
وون احد زرگرن غزل رنگمار   کافر سپدتھ کورم اقرار
(احد زرگر)

احد زرگر زاگہِ شلس   لاگہِ غزل خان
باغ رضوانہ حورہ ولس   سے میہ دلس کان
(احد زرگر)

چیتہ محمود مستانے   برۍ برۍ پیالہ موے
ازلی چھکھ غزل خوانے مہ کر دیوانگی یے
(محمود گامی)

یم ساری مصرعہ چھہِ وژنن ہندۍ ۔

لل دیدِ ہند "واکھ تہ وژن” مصرعہ الگ ترٲوتھ چھہ یہ تحقیق کرنک ضرورت زِ وژنس وژن کرہ پیٹھہ تہ کتھہ پاٹھۍ گوو شروع۔ کلیات مہجورس منز چھہ صفحہ 207 پیٹھ اکس وژنس متعلق نوٹ زِ مہجورن چھہ تتھ پننہِ اتھہ تلہ کنہِ یتھہ پاٹھۍ تاریخ درج کورمت۔ ” 2 ہار 98 بکرمی کو غزل شروع ہوکر7 ہار 98 بکرمی کو ختم ہوئی۔” گویا مہجور تہِ چھہ پننین وژنن غزلے ونان اوسمت۔ ابن مہجور تہِ چھہ اتھۍ صفحس پیٹھ بییس نوٹس منز وژنس غزلے ونان۔ مہجور سند پیٹھم غزل تہِ چھہ فارمہِ کنۍ ژکہِ وژن۔ کلیات مہجورس منز چھیہ اتھ غزلہ کس صورتس منز کتابت کرناونہ آمژ، یمہِ کنۍ اتھ پیٹھ پرن والین غزلک دھوکہ لگان چھہ تہ رفیق رازن تہِ چھہ نہ امہِ کس فارمس کن زیادہ ظۅن دیتمت۔ بہ کرن یہ وژنہ چہ شکلہِ منز بۅنہ کنہِ پیش۔

للونۍ میہ چھم چانۍ لولہ چھۅکھ   مۅکھ ہاوتو مارہ متیو
ینہ چانہِ ژلنم غم تہ دۅکھ   رۅخ ہاوتو مارہ متیو

دل میون گۅڈہ برمرووتھن   پتہ کیازِ داوس لوگتھن
دعدہ آدنکۍ لولکۍ سخن   یاد پاوتو مارہ متیو

درایہ سازہ منزہ آوازِ ناز   بوزتھ پتھر پییہ عشقہ باز
بے جان امہِ سازک یہ راز   ننۍ راوتو مارہ متیو

چون رنگ و روپ چون خط و خال   ڈیشتھ ژلاں غم تے ملال
ظلمکۍ تہ ستمن ہندۍ خیال   مشراوتو مارہ متیو

ییلہ مس چھہِ چاوان عاشقس   پر تہ پان ہوے باسان تس
ژہ تہِ پننہ اتھہ ستۍ لولہ مس   میہ تہِ چاوتو مارہ متیو

دل میون لولہ نارس اندر   یژ صاف گوو زٲلتھ کھۅچر
وۅنۍ لولہ بازارس اندر   مۅلناوتو مارہ متیو

چھکھ زندگی بخشاں کمن   یہ تہِ تازہ کرتن میون من
بے حیس گومت شونگمت چمن   وزناوتو مارہ متیو

ییلہ عقلہِ کور لولس جواب   ووتھ شور عالم گوو خراب
وزناوۍ متہِ فتنک یہ خواب   بییہ ساوتو مارہ متیو

پوشہ نولہ سندین آلون   گل پانہ گلۍ چھِکھ آلون
مہجور سنزہ کتھہ کیا لوَن   پرکھاوتو مارہ متیو

امچ وژنہ ہیت درایہ وۅنۍ صاف ننۍ ۔ پریتھ بندس منز چھہِ تریہ ہم قافیہ مصرعہ یس زن وژنہ کہ اکہ ہیتک معمول چھہ۔ ژورم مصرعہ چھہ ووج۔ عام طور چھہ وژنن منز ہیرہ بۅن ہوُے ووج آسان مگر
کینژن وژنن منز چھہِ حبہ خاتونہِ سندِ پیٹھے متنوع ووج تہِ میلان۔ مثلا یمن وژنن ہندۍ ووج:

وارۍ وین ستۍ وارہ چھس نو
ہنہِ لو ہنہِ لو ہنہِ لو
بو وِلہ ونے یارہ تے

زیر مطالعہ وژنہ چہ مخصوص فارمہِ منز چھہِ مہجورنۍ بییہِ تہِ کینہہ بٲتھ یمن منز بنم مشہور بٲتھ تہِ چھہ۔
ویسۍ یے سہ میون دلبر   شیریں کلام ییہ کر
یس کن وچھتھ ژلاں شر   سے گل اندام ییہ کر

ییہ نا سہ یار میونے   ژلہِ ہے میہ زونہِ گرونے
وندس قبیلہ کرونے   روزس غلام ییہ کر

یہ بٲتھ چھ وژنہ چہ چالہِ کلیات کس صفحہ 118 پیٹھ درج۔ وۅنۍ زن لیکھون یہ غزلہ چالہِ:
ویسۍ یے سہ میون دلبر شیریں کلام ییہ کر
یس کن وچھتھ ژلاں شر سے گل اندام ییہ کر
ییہ نا سہ یار میونے ژلہِ ہے میہ زونہِ گرونے
وندس قبیلہ کرونے روزس غلام ییہ کر

کانہہ وژن خالص غزلہ چالہِ لیکھنہ سیتۍ ما بنہِ سہ غزل؟ یتھے پاٹھۍ وچھون مہجور سند یہ مشہور بٲتھ تہِ کلیات کس صفجہ 127 پیٹھ۔
باغ نشاط کے گلو   ناز کران کران وۅلو
خندہ کراں کراں وۅلو   مختہ ہراں ہراں وۅلو

امی چالہِ چھہِ اسہِ نش محود گامی تہ رسول میرنۍ تہِ کٔژ وژن۔ یمن منز یم مشہور بٲتھ تہِ چھہِ:
کیا جان چھی شوبانے پرنور زہ دردانے
(محمود)
سوز دلک بہ کیا ونے روز دما بوز کنے
(محمود)
یارہ لوگتھ سنگ دل چانہ چھم جانک قسم
(رسول)
زلف زنجیر یارس ونس بو زار کوت گوم
(رسول)
جب آیا تو نے گھبرایا ہمار من الا جانو
(رسول)
یارہ رۅے ہاوتم برقہ تلی محرابے بمن لگیو
(رسول)

یمن منزتہِ چھہِ رسول میرنین ترین وژنن ہندۍ بند غزلکۍ پاٹھۍ شعر بنٲوتھ کتابت کرناونہ آمتۍ ۔ شاید آسن یم یتھے پاٹھۍ مسودن منز تہِ۔

جب آیا وژنہ کس مطلعس چھیہ سۅے بٲش یۅس مہجورنس سندس مطلعس چھیہ، یتھ پیٹھ رفیق رازن اعتراض چھہ کورمت۔
جب آیا تو نے گھبرایا ہمارا من الا جانو
دیا دل تو پراے ساتھ رلایی تن الا جانو

یہ مطلع وچھتھ تہِ چھہ باسان زِ اتھ منز آسہِ تن، من، بیترِ قافیہ تہ الا جانو ردیف۔ مگر ییلہِ اسۍ امہِ بٲتکۍ باقی شعر وچھان چھہِ اکھ چھہ یہ ننان زِ یہ چھہ نہ غزل بلکہ وژن تہ بییہ یہِ زِ تن، من چھہ نہ امیک قافیہ۔ حقیقت چھیہ یہ زِ غزلک فارم چھہ غزلس نزدیک (1) یمہ کنۍ سانین وژن شاعرن گڑبڑ اوس گژھان۔ تمن چھیہ نہ صنفی (ہیتی) امتیازن منز شاید تمہ رنگہ دلچسپی ٲسمژ یمہ رنگہ اسہِ چھیہ۔

ممکن چھہ یمن بٲتن منز ما آسہِ ہے یمو شاعرو شعوری یا غیر شعوری طور غزل وننک شروعات کورمت مگر وژن وننکۍ عادتن چھہِ مطلع پتہ باقی بٲتھ وژنہ چہ فارمہِ کن پھرۍ متۍ۔ کنہِ ساتہ چھہ یہ ونن مشکل گژھان زِ بٲتس ونوا وژُن کنہ غزل۔ مگر محض غزلکۍ پاٹھۍ وژنکۍ بند لیکھنہ ستۍ بنن نہ یم بٲتھ غزل۔ یتھے پاٹھۍ ہیکہِ نہ محض یہ کتھ کنہِ وژنس غزل بنٲوتھ زِ تتھ منز چھہ فارسی وزن ورتاونہ آمت۔ محمود گامی تہ رسول میرن چھہِ وژنہ ہا فارسی وزنن پیٹھ ونۍ متۍ۔

رفیق رازن قافیس پیٹھ اعتراض چھہ غزلہ کس حدس تام صحیح مگر چونکہ مہجورن زیر مطالعہ بٲتھ چھہ نہ غزل، لہذا چھہ یہ اعتراض پانے زایل گژھان۔کیا محمود گامی، کیا رسول میر، کیا عبدالاحد آزاد تہ کیا غلام احمد مہجور یم شاعر چھہِ ژکہِ وژن شاعر ٲسۍ متـۍ۔

رفیق رازُن بیاکھ سوال یس تمۍ امہِ کس وزنس متعلق تلمت چھہ۔ (تتھ پیٹھ کرو دوبارہ کتھ۔)

(1)
ہوئے مر کے ہم جو رسوا   ہوئے کیوں نہ غرق دریا
نہ کبھی جنازہ اٹھتا   نہ کہیں مزار ہوتا

جب وہ جمال دل فروز   صورت مہر نیم روز
آپ ہی ہو نظارہ سوز   پردے میں نہ چھپائے کیوں

یتھۍ ہوۍ غزل آسہ ہن سانین شاعرن وارہ کارہ وژن باسان۔

امین کامل سند آبایی مکانہ

DSC03050

یہ چھہ امین کامل سند آبائی مکانہ تہ تم چھہِ ییتی زامتۍ تہ پریتھیمتۍ۔ اندازہ چھہ کرنہ یوان زِ یہ مکانہ آسہِ کم از کم ڈۅڈ ہتھ ؤری پرون۔ پننس لۅکچارس منز چھس بہ اور گومت۔ کھورِ طرفک زہ دارِ کٔرتھ کمرہ اوس بیٹھک، اتھ پیٹھہ کنہِ کس شیشہ دارِ پٹۍ وٲلس کمرس منز چھس بہ شونگمت۔ یم شیشہ دارِ چھیہ اتھ پتہ لگاونہ آمژہ۔ امہ برونہہ آسہ ہن اتھ تمے پنجرہ دارِ یم اتھ دچھنہِ طرفہ ونہِ تہِ چھیہ۔ برونہہ ٲسۍ دارین زہ پٹۍ آسان۔ بند پٹۍ یم اندر کن کھلان ٲسۍ تہ پنجرہ پٹۍ یم نیبر کن کھلان ٲسۍ۔ میہ چھہ یاد اکہ لٹہ کتھ تام کتھہِ پیٹھ روزوس بہ اتھ مکانس برونہہ کنہِ چہ کچھہِ تل ژورِ۔ سٲری ٲسۍ میہ گامۍ گامس ژھاران۔ اتھ کچھہِ تل ٲسۍ اکثر ہونۍ بیہان۔

DSC03057

امہ مکانہ چہ لرِ ہند فوٹو۔ کامل صٲبن کمرہ اوس پتمہ طرفہ دویمس پورس پیٹھ۔ بند دٲر یتھ اکس پٹس شیشہ چھہ بییس پٹس گلۍ یلے چھہِ۔ سہ اوس اکثر اتھ دارِ پیٹھ بیہان۔

اتھ مکانس چھہ تقریبا سورے پرونے۔ شیشہ داریو تہ چھتہ علاوہ چھہ سورے ڈۅڈ ہتھ ؤری پرون۔ ڈۅڈ ہتھ ؤری برونہہ آسہ ہن یتھۍ مکانہ اکا دکاہے آسان۔

کاملس روو کاپرن ہے ہے
دلے لامن تہِ لوب نہ لاس حمد

گاہ چون پیوان گٹہِ

candle

گاہ چون پیوان گٹہِ
اکہِ لٹہِ ییہم نا

ییلہ میانۍ موج گذرییہ، تس ٲسۍ میہ ژور ؤری وچھنس گمتۍ۔ پننہ تسلی خاطرہ اوسس بہ واریاہس کالس چۅرتہ گژھتھ پریتھ رٲژ نیت کران زِ بہ وچھن سۅ خوابس منز۔ مگر صبحس اوسس سیٹھا مایوس گژھتھ وۅتھان۔ اتھ دوران ٲس میانۍ جذباتی حالت ناقابل بیان۔ صرف آم حبہ خاتونہِ ہند یہ شعر بکار یس یمن دۅہن میٲنس دلس تہ ذہنس پیٹھ اوس یوت تام میہ موج خوابۍ آیہ۔ یتھۍ ہوۍ شعر چھہِ میہ اکس ہمعصر عربی شاعر سنزِ اکہِ نظمہِ ہنزہ یم زہ لٲنہ یاد پاوان۔

والجُمَل القصيرة
أجمل وسيلة لعبور المحيطات

تہ ژھوٹۍ جملہ چھہِ
سدرس تارہ ترنکۍ بہترین وسیلہ

یہ ٲٹھن (8) لفظن ہند شعر چھہ کاشرِ زبانۍ ہند ژھوٹہِ کھوتہ ژھوٹ شعر تہ اتھ منز چھیہ سۅ قوت زِ امۍ تورس بہ اتھ مشکل وقتس منز بیہ زبان جذباتن ہندس سدرس تارہ۔ یہ شعر اوس امہ برونہہ تہِ امہ چہ غنایژ کنۍ زیوِ کھوتمت، مگر یہ ہیکہِ یتھس کنہِ موقعس پیٹھ میہ یتھہ پاٹھۍ بکار یتھ، امیک اوسم نہ کانہہ اندازہ۔ ییلہ ییلہ کانہہ شعر پرنہ یوان چھہ چاہے سہ ہتہ بود ؤری پرون آسہِ، تمچ تخلیقی عمل چھیہ پرن وٲلس منز منتقل گژھتھ زو لبان۔ بلکہ ونہ بہ یہ کتھ یتھہ پاٹھۍ زِ تخلیقی عمل چھیہ شعر سپدنہ برونہہ، دوران تہ پتہ تہِ جاری روزان۔ تخلیقی عمل چھیہ ہمیشہ موجود تہ حاضر۔ کہنی چھہ نہ پرون۔

غنایت چھیہ انسان سندس کنرس جلوہ ریز کران۔ یمہ شعرچ غنایت چھیہ امہ چہ فارمہ (ہیتک) اکھ اٹوٹ حصہ۔ وژنک اکھ اکھ لفظ چھہ موسیقی ہنزن تارن زیر دوان۔ وچھو امہ شعرچ صوتی تفصیل۔

[گٹہِ] تہ [لٹہِ] چھہِ اتھ شعرس منز تیتۍ ننۍ زِ قافیہ چھہ امہ چہ ٲڈرنہِ ہند مرکز باسان۔ بلکہ چھہ یمن سیتۍ بیاکھ لفظ [اکہِ] تہِ قافیہ رنگۍ رلان۔ امہ علاوہ چھہِ [گٹہِ] تہ [گاہ] تہِ آوازہ ہشرہ کنۍ قافیہ چی اکھ صورت۔ قافیہ علاوہ چھیہ نون غنایی آواز تہِ ترییہ لٹہِ [چون، پیوان، نا] لفظن منز ورتاونہ آمژ۔ /ی/ آواز تہِ چھیہ [یوان] تہ [ییہم] لفظن منز مشترک۔ /او/، /آ/، /ای/ تہ /آ/ ژور زیٹھۍ مصوتہ تہِ چھہِ امی ترتیبہ شعرس منز ژھۅٹین مصوتن مقابلہ چھکرتھ۔ امہ علاوہ چھہ /ہ/ آوازِ ہند تکرار تہِ [گاہ] تہ [ییہم] لفظن منز موجود۔

لسانی پہلو تہِ چھہ دلچسپ۔ شاعر چھہِ گرامر کین اصولن ہنز خلاف ورزی اکثر کران۔ صحیح فقرہ چھہ [چون گاہ] مگر شعرس منز چھہ پھر تھُر [گاہ چون] بناونہ آمت شاید لفظ "گاہ” سیتۍ شعر شروع کرنہ خاطرہ تاکہ یہ روزِ زیادہ پہن نظرن تل۔ ژۅن لفظن ہندس اتھ مصرعس منز چھہ امدادی فعل [چھہ] حذف کرنہ آمت یمہ کنۍ [پیوان] لفظ نون چھہ درامت۔ دویمس مصرعس منز چھیہ گرامرچ سۅ حالت ورتاونہ آمژ یتھ منز سوال تہِ چھہ، تمنا تہِ چھیہ تہ حسرت تہِ۔

جایہ سیتۍ چھہ وقت تہ وقتہ سیتۍ چھیہ جاے۔ یمن دۅشونی ہندس اتھس منز چھہ انسان مجبور۔ گۅڈنکس مصرعس منز چھہ جایہ ہند متعلق فعل [گٹہِ] دورِرک تہ دویمس منز وقتک متعلق فعل [اکہ لٹہِ] چھونرک احساس وۅتلاوان۔ شاعرس چھہ معلوم زِ جایہ ہنزِ علیحدگی منز ہیکہ صرف گاہ پیتھ تہ وقتہ کس یک جہتی بہاوس منز چھہ اکی لٹہِ یُن گژھن ممکن۔

یہ شعر چھہ نہ صرف موسیقی تہ لسانی ورتاو بلکہ گۅڈنکۍ سے مصرعس منز اکھ استعارہ قایم کران۔ اکھ معمولی شاعر ونہِ ہے "چانی یاد چھیہ یوان” مگر گٹہِ منز گاہ پیون چھہ یاد تہِ، خواب تہِ، کُنیر تہِ، زون تہِ، خلوت تہِ، جلوہ تہِ، بے ثباتی تہِ، وۅمید تہِ غرض سٲری امکانات پانس منز شرپراوان۔ امہ شعرہ کہ گۅڈنکہ مصرعک خیال چھہ زِ گاش چھہ گٹۍ سے منز نون نیران۔ امچ قدر چھیہ انہِ گٹۍ سے منز۔ یمن ہند وجود چھہ اکھ اکۍ سندِ سیتی۔ شعرک کردار چھہ پانس رٲژ سیتۍ (انہِ گٹس) تہ پننس معشوقس زونہِ سیتۍ (گاشس) مشابہت دوان تہ یہ امکان تہِ پیدہ کران زِ انہِ گوٹ چھہ گاشچ کمی تہ یہ کمی چھیہ شعری کردار سندِ خاطرہ ناقابل برداشت۔ یہ خیال چھہ رسول میر سندس یتھ مصرعس منز تہِ:

متہِ میانہِ مہ رۅخسارہ وچھہتھ بہ گٹے لو

شاعری چھا زمانک وہُون نبض؟

اگر اسۍ شاعری معنیس زیادہ پہن ماتحت کرون یتھہ پاٹھۍ سبک ہندی فارسی تہ اردو شاعری ٲس، یہ چھیہ اکھ خالص ذہنی عمل بنان یتھ منز خیالچ ندرت تہ باریک بینی مقصد شعر بنان چھہ۔

یتھے پاٹھۍ اگر اسۍ شاعری استعارن تہ علامژن ہند اکھ زٲنتھ مٲنتھ تراونہ آمت زال بناوون یتھہ پاٹھۍ جدید شاعرو کوشش کٔر، تیلہ چھیہ شاعری اکھ تفریحی وقت گذاری بنان یمیک مقصد شاعرس تہ قاری یس درمیان ژھیپہِ ژھٲرس گندنہ علاوہ کہنی چھہ۔

شاعری نادر تہ جاذب توجہ تہ حیرت انگیز صرژن ہند جمگٹہ بناونہ سیتۍ تہِ چھہ اسۍ اکس تژھہِ عملہِ منز آورنہ یوان یمچ افادیت مشکوک چھیہ۔

شاعری منز گژھہِ پننہِ زمانک وہوُن نبض آسن۔ یہ گژٔھ نہ متۍ کتھن ہند اظہار بننۍ۔ یہ بحث چھہ نہ آسان، مگر میہ چھہِ بار بار یم خیالات تنگ کران۔

کاشرِ شاعری منز تاکیدی عروضک نظریہ

Grierson
سر جارج گریرسن

جارج گریرسن ییلہ ہندوستان واپس گژھتھ لل دیدِ پیٹھ لیکھنہِ بیوٹھ، امس پیوو کاشرِ عروضک خیال۔ امۍ لیوکھ آرل سٹاینس یُس کشیرِ منز اوس۔ گریرسن تہ سٹاین ٲسۍ دۅشوے ہندوستانۍ زبانن ہندۍ عالم۔ یہند لسانیاتی علم اوس تمہ زمانہ کس رایج تقابلی تواریخی لسانیاتس سیتۍ تعلق تھاوان۔ یم ٲسۍ واریاہن زبانن واقف مگر کاشرِ بول چال کس حدس تام چھیہ یہنز زان باسان رژھ کھنڈ محدودے ٲسمژ۔ آرل سٹاینن لٲج پرژھہ گٲر کرنۍ مگر کانسہ ٲس نہ خبرے زِ وزن کیا چھہ۔ ساروے وونہس زِ اسۍ چھہِ امیک فیصلہ کُنہِ علمہ بجایہ پننیو کنو سیتۍ کران۔ لہذا لوگ نہ چارہ آرل سٹاینس پننیو کنو کاشر شاعری بوزنس۔ امۍ بلوو حاتم تلوونۍ تہ دوپنس گیو سا کاشرۍ بٲتھ۔ سہ گوو گیوان تہ سٹاین گوو اندازہ کران زِ یمن منز کیا وزن چھہ۔ حاتم ما اوس بٲتھے اوت گیوان، سہ اوس پورہ دلیل ونان۔ بہرحال، یم بٲتھ ٲسۍ نہ فارسی وزنس سیتۍ برابر رلان تہ نہ ٲسۍ ہندوستانۍ زبانن ہندس ماترا وزنس سیتۍ رلان، لہذا کور امۍ پننین کنن پیٹھ بھروسہ کٔرتھ فیصلہ زِ یمن بٲتن منز چھہ تاکیدی وزن۔ اتھ سند ژھانڈنہ خاطرہ ووت یہ کُنی دوِ ایس پی کالج کس پنڈت نیتانندا شاستری یس نش۔ شاستری ین کورنس تایید۔ امہ پتہ چھہ گریرسن تہِ پانہ کشیرِ تٔرتھ پننۍ پرژھہ گٲر کران مگر نوو کینہہ لبان چھہ نہ۔ گریرسنن ژھونڈ لل واکھن منز تہِ سے تاکیدی وزن یُس سٹاینس حاتم تلوانۍ سندین بٲتن منز میولمت اوس۔ یتھہ پاٹھۍ پیوو کاشرِ شاعری منز تاکیدی عروضک نظریہ تھنہ۔

سوال چھہ کاشرس منز چھا پزۍ پاٹھۍ تاکیدی وزن اوسمت؟ اگر چھہ اوسمت، سہ کتھہ پاٹھۍ ہیکون ثابت کٔرتھ؟ اگر چھہ نہ اوسمت، تیلہ کتھہ پاٹھۍ لوگ یمن ماہر لسانیاتن دھوکہ۔ یمن سوالن ہند جواب ژھانڈنہ خاطرہ پرژھہ بہ بیاکھ سوال زِ یمن ماہر لسانیاتن کوتاہ یقین چھہ اوسمت زِ کاشرِ شاعری منز چھہ تاکیدی وزن ورتاونہ آمت؟

aurel_stein
سر آرل سٹاین

سٹاین چھہ ونان ” میہ کور گریرسن سندس حکمس آمنا تہ صرقنا یمہِ مکمل احساسہ سان زِ میانہِ لسانیاتی تربیژ منز اوس نہ وزنیاتک کانہہ مخصوص مطالعہ شامل۔” اگر یہ انکسار چھہ، تیلہ چھہ یہ قابل رشک۔ اگر یہ اعتراف چھہ تیلہ تہِ چھہ یہ قابل رشک۔ بہرحال، پتہ چھہ ونان زِ بٲتھ بوزتھ ووتس یتھ نتیجس زِ یمن بٲتن ہند وزن چھہ محض تاکیدی ہیجلین ہندس تعدادس پیٹھ دٔرتھ، "تمہِ وقتہ تہِ ییلہ یمن ہند ڈھانچہ ظاہری طور ہندی وزنن ہندِ نمونہ مطابق چھہ۔” یعنی کینژن جاین چھہ امس ہندی یک مقداری وزن کٲم کران باسیومت۔ مزید چھہ ونان زِ یمن منز چھیہ کُنہِ ساعتہ برابر تاکیدن ہندِ اصولچ خلاف ورزی تہِ سپدان۔

وچھو گریرسن کیا چھہ ونان۔ "درجن واد بٲتن ہندۍ طویل تہ مفصل تجزین واتنووس نہ بہ یمہِ حقیقژ ورٲے کُنہِ حتمی نتیجس تام زِ تاکیدس چھہ اتھ منز اہم حصہ باسان۔ ییتہِ ہُتہِ چھہِ معروف وزنن ہندۍ آثار میلان مگر کُنہِ جایہ تہِ پکۍ نہ تم اکی وقتہ کینژو مصرعو برونہہ۔” یعنی گریرسنس چھہ نہ بدل کانہہ وزن یمن بٲتن منز مسلسل لبنہ یوان، لہذا چھہ تس تاکیدن ہند دخل باسان، خاص کر یہ خیال برونہہ کنہِ تھٲوتھ زِ سٹاین تہِ چھہ شاستری یس سیتۍ رٔلتھ اتھۍ نتیجس تام ووتمت۔ گریرسن چھہ امہ پتہ برونہہ کن لل دیدِ ہندین دۅن واکھن فی مصرعہ ژور تاکید لگٲوتھ ونان "اگرچہ تاکید وزنک کُنے معیار چھہ، کینژن بٲتن (مطلب واکھن) منز چھہ ہندوستانۍ تقطیع ہندین معروف طریقن ہند دور دراز صداے بازگشت تہِ برونہہ کن یوان۔” گریرسن سند اشارہ چھہ ہندی کس ماترا وزنس کن۔ امہ پتہ چھہ ونان "یتھے پاٹھۍ چھہِ کینہہ باقی بٲتھ (مطلب واکھ) فارسی یا ہندوستانۍ معروف وزنن ہندۍ آثار ہاوان۔” امہِ انتشارہ کنۍ چھہ گریرسن اکھ عجیب غریب نتیجہ کڈان یمیک ذکر برونہہ کن ییہ۔ فی الحال ونو زِ گریرسن تہ سٹاین سندۍ یم بیان چھہِ یمہ سوالک تشفی بخش جواب فراہم کران زِ کاشر شاعری ہندِ تاکیدی وزنہ چہ بنیاذ ہند کوتاہ چھہ یمن یقین اوسمت۔