پی این پشپ


پی این پشپ زاے 1917 منز تہ 1996 منز گیہ سرگواسۍ۔ خبر کٲتہو ازکیو ادیبو چھہ تہند ناو بوزمت؟ خبر کٲتہن چھہ یہند ملاقات نصیب سپدمت؟ بہ چھس نہ کالج کٔرتھ کشیرِ زیادہ رودمت، تاہم یمن سیتۍ چھہ میہ اکاڈمی، ریڈیو تہ یونیورسٹی منز منزۍ منزۍ ملاقات سپدمت۔

اکھ چیز یس میہ خاص طور یاد پیوان چھہ، یم ٲسۍ اتھہ واس سیٹھا چیرہ کران، میانۍ پاٹھۍ ٲسۍ نہ تھوکمت اتھہ بیہ مٲل پاٹھۍ دوان، حالانکہ امہ وقتہ ٲسۍ یم بزرگی ہندین ایامن منز داخل سپدۍ متۍ۔ پشپ اوس زبردست متحرک شخصیتک مالک۔ ہمیشہ اپ بیٹ، سیٹھا انرجی وول ادیب۔ کتھہ اوس تیز تیز تہ پیوٹھس پیٹھ کران۔ زندگی متعلق پرامید نقطہ نظر تھاوان۔

pushp
از پییہ میہ یم یاد۔

پی این پشپ سنز دلچسپی ٲس زبان، لسانیات، تحقیق، تنقید، شاعری، بیترِ۔ سیٹھا پورمت شخص۔ پشپ چھہ ترقی پسند دورس منز پزۍ پاٹھۍ کاشرِ زبانۍ لول برن والین کژن تام نفرن منز سرس، خاص کر نثر لیکھن والین ترین ژون شخصن منز اوس سہ پیش پیش۔ ترقی پسند دورس منز اوسے نہ کانہہ نثر لیکھان۔ افسوس ز تمن لوکن ہند ذکر چھہ سانین تذکرن تہ تواریخن منز میلان یم نہ اتھ دورس منز کاشرس ادبی سرمایس انزۍ منزۍ تہِ ٲسۍ گمتۍ۔ حالانکہ پشپ اوس نہ باقین ہندۍ پاٹھۍ معلوماتی مضمون لیکھان یۅس محض ترجمہ بازی ٲس۔ پشپ سند مطالعہ اوس کاشرِ زبانۍ تہ ادبہ کس تجزیس تہ تبصرس منز نون نیران۔ سہ اوس نظریاتی کتھو کھوتہ زیادہ کاشرِ ادبہ کس متنس پیٹھ کتھ کران۔ امس ہوۍ ہمہ جہت ادیب چھہ سیٹھا کم نظر گژھان، یمن شاعری پیٹھ تہ جان نظر آسہ تہ تنقیدس پیٹھ، یمن پرون متن تہ پرن تہ شیرن تگہ تہ، نوین ادبی نہجن پیٹھ کتھ تہ تگہ کرنۍ۔ جدید دورس منز تہِ رود پشپ نوو نوو سوچ ہتھ سیمنارن منز شرکت کران۔ کاشرین ادیبن منز اگر کانسہ لسانیات کین بنیادی تصوراتن ہند ہمعصر تہ صحیح علم اوس، سہ اوس صرف تہ صرف پی این پشپس۔

پشپ سندِ تنقیدی شعور ک پتاہ چھہ تمۍ سندِ 39 صفحن ہند تمہِ مضمونہ پیٹھ لگاون آسان یُس تمو نادم صٲبنہ شاعری پیٹھ "نادم سندۍ باوژ انہار” (مطبوعہ شیرازہ نادم نمبر) عنوانہ لیوکھ۔ امہ مضمون چھہ پشپ سند اردو تہ کاشرِ ادبک ، نادم صابنہِ شاعری ہند، تہ ہمعصر تنقیدی تصوراتن ہندمطالعہ نون نیران۔ مثالہ پاٹھۍ نیون یہ جملہ:

"توتہِ پیوو نادم جلدے پایس تہ نوۍ نوۍ تجربہ کران ووت ‘دپنہ’ پیٹھہ ‘باونس’ تام۔ ‘سۅوز ‘نظم چھیہ نادم نہِ امہِ باوژ سفرہ کس گۅڈہ منزلس گاشراوان۔”

خبر پی این پشپس پیٹھ چھا تمس زیادہ بہتر پاٹھۍ زانن والۍ تہ تسندین لیکھن سیتۍ زیادہ واقف کٲنسہ ادیبن کانہہ مضمون لیوکھمت؟

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s