فروعی معاملہ


1961 ٹھس دوران وننہ آمژن دۅن نظمن ہند مطالعہ چھہ سیٹھا دلچسپ۔ اکھ کامل سنز “نیتھہ ننۍ معنی” تہ بیاکھ راہی سنز “ریہہ تہ رقص”۔ مگر میہ چھہ نہ ییتہِ نس تحسین تہ تنقید کہ لحاظہ یہند تقابلی مطالعہ مقصد۔

دوشوے نظمہ چھیہ یمن شاعرن ہنزہ اہم نظمہ، خاص کر تمہ زمانہ چہ۔ دۅشوے نظمہ چھیہ اکۍ سے وزنس منز لیکھنہ آمژہ، کاملنۍ اختصارہ سان تہ راہینۍ زیچھر دِتھ۔ دوشوےنظمہ چھیہ غزلکۍ پاٹھۍ خودمختار شعرن پیٹھ مبنی، کاملنۍ زیادہ تہ راہی ینۍ کم۔ دۅشونی نظمن منز چھیہ کتھ لگ بھگ تہ جزوی طور ہشی وننہ آمژ، کاملنۍ طنزچ ژھاے ہیتھ، اشاراتی تہ رمزیہ اندازس منز تہ راہی سنز کتھ سیدِ سیود تہ بیانہ اندازس منز۔

وٲنسن پیٹھ کمۍ دوریر یوژھ
تمہ پژِ ما سنسارس زایہ
(کامل)

فرصت کم تے ہاوس کیتۍ
پرارُن گوو بلۍ ژاپن گار
(راہی)

یم ہشر چھہِ دلچسپ:

زلفن چانین ہند گون سایہ (کامل)
چانین زلفن مشکنۍ دار (راہی)

کمۍ دوپ ییتہ چھیہ نہ آدمۍ بوے
یم کیا ، ادہ چھا ساریۍ ژھایہ (کامل)
عرشس پیمژ آدمۍ ژھاے
فرشکۍ سجدے وارفتار (راہی)

کامل سنز نظم چھیہ گلریز رسالہ کس فروری 1961 شمارس منز چھپان تہ راہی سنز نظم چھیہ مارچ 1961 شمارس منز چھپان۔ دوشوے نظمہ چھیہ سیٹھا معمولی تبدیلی کرنہ پتہ یمن شاعرن ہنزن شعرہ سۅمبرنن منز شامل۔ کاملنۍ "لوہ تہ پروہ” (1966) تہ راہی سنز "سیاہ رودہ جرین منز” (1997)۔ راہی چھہ کتابہ منز اتھ نظمہ تلہ کنہِ اکتوبر 1960 تاریخ دوان۔ (میانہ خیالہ چھہ نادم تہ راہی سنزن کتابن منز واریاہن چیزن غلط تاریخ دتھ۔) اگر یہ نظم اکتوبر 1960 منز وننہ ٲس آمژ، راہی ما دیہ ہے تیلہِ گلریز کہ فروری 1961 شمارہ خاطرہ شرین ہند خاطرہ "نقلہ ژور” ہش بے معنی نظم یا نومبر 1960 کہ شمارہ خاطرہ امہ اہم نظمہِ بدلہ پننۍ اکھ روایتی غزل یمیک مطلع چھہ:

دلہ میانہِ بیہ سۅکھ روز مگر کرۍ ز نہ تنگ دل
شمعو ژیہ ہری سوز اگر شولہِ یہ محفل

اتھ غزلس چھہ راہی پننہِ کتابہِ منز تلہ کنہِ تاریخ جنوری 1960 لیکھان یعنی سہ چھہ تمۍ سندِ مطابق اکتوبر 1960 منز وننہ آمژ "ریہہ تہ رقص” ہش بہترین نظم اوک پاسے تھٲوتھ  نو ریتھ پرانۍ غزل چھپنہ خاطرہ دوان۔ یاتہ چھہ نہ راہی یس پننہِ نظمہِ ہنز اہمیت معلوم ٲسمژ نتہ چھہ سہ اتھ کھٹتھ تھاون ضروری زانان اوسمت۔ پیٹھمہِ غزلک اکھ دلچسپ طنزیہ شعر چھہ:

امہ سیتۍ اگر دور دلن سپدِ کدورت
مۅلوُن چھہ نہ شعرس تیلہِ گۅنمات چھہ کامل

یہ شعر چھہ راہی "سیاہ رودہ جرین منز” کتابہِ منز غزل شامل کرنہ وزِ ترٲوتھ ژھنان۔ کاملن کر چھیہ پننی نظم ونی مژ تہ چھیہ نہ پتاہ۔ مگر سہ چھہ یہ نظم "کاشر بزم” چہ فروری 1961 چہ میٹنگہِ منز پران۔ راہی تہِ اوس اتھ میٹنگہِ منز شامل۔ تمۍ پور نہ اتھ منز کانہہ چیز۔ امہ برونہہ چھیہ امہ بزمہِ ہنز میٹنگ جنوری 1961 منز گژھان یتھ منز راہی "فتح” تہ "معافی نامہ” پران چھہ۔  کامل سنزِ "نیتھہ ننۍ معنی” نظمہِ متعلق چھہ اختر محی الدین میٹنگہِ منز ونان زِ "اسہِ سارنے اوس یہ خیال رٔٹتھ زِ برونٹھ کن چھا لیکھنچ کانہہ وتھا کنہ نہ۔ اسہِ یا اوس شعرن ابہام گژھان نتہ ٲسۍ رومانیتس کن دوران۔ یہ نظم چھیہ رمز پیش کٔرتھ اکھ صحت مند وتھ ہاوان۔” راہی چھہ اتھ "نفیس نظم” ونان تہ مقبول (بقول مظفر عازم شاید مقبول حسین جرنلسٹ یس "مزدور” اخبار کڈان اوس) "یہ نظم چھیہ تمہِ اکہِ نوِ ترایہ ہند دسلابہ کران یتھ اشاریت ونان چھہِ۔” گویا راہی سنزِ "ریہہ تہ رقص” نظمہ ہند چھہ نہ کٲنسہِ پے پتاہ اوسمت۔ مگر راہی سنز نظم چھیہ رہہِ (10) ریتہ پتہ یکدم گلریز کس مارچ 1961 منز ننۍ نیران۔

رفیق راز چھہ میٲنس بلاگس (ونان کیہہ تام) پیٹھ اکس پوسٹس پیٹھ کمینٹ کران ونان "کاشرس منز اوس اکھ وبا پھٲلیومت۔ کانہہ اوس لیکھان کنہِ بحرس منز غزل تہ سیتی اوس دعوی کران زِ یہ بحر اون میۍ کاشرس منز۔ میہ لیوکھ 1975 منز اکھ غزل۔ (بہ چھس کنے تہ وسکھنا میہ نش خدایہ نیصف رآژ) بہ اوسس امہ وزِ یونورسٹی منز ایم اے کران۔ راہین بوز یہ غزل۔ واریاہو بوز یہ غزل۔ یہ غزل گیہ سیٹھا مقبول۔ میہ تہِ کور دعوی زِ ہتہ سا ببا یہ بحر اونوہ میہ گوڈنچہ لٹہِ کاشرس منز۔ کینژِ وہرۍ چھپیہ راہی صٲبنۍ غزل ( زہر ٲخر، شہر ٲخر) اتھۍ بحرس منز۔ غزل آیہ میانہِ غزلہ پتہ دۅیہ ترییہ وہرۍ لیکھنہ مگر تاریخ تروونس 1975 یعنی سے سنہ یتھ منز میہ پننۍ غزل لیچھمژ ٲس۔”

غلام نبی فراق چھہ "کاشر بزم” چہ جنوری 1961 چہ میٹنگہِ منز پننۍ نظم "بلبلس کن” پران یۅس اتھۍ ریتس منز وننہ ٲس آمژ (بحوال "صدا تہ سمندر”)، راہی چھہ پننہِ زہ نظمہ "فتح” تہ "معافی نامہ” پران، مگر ییلہ یمو منزہ دویم نظم چھپان چھیہ تاریخ چھہ اپریل 1958 دوان (بحوالہ "سیاہ رودہ جرین منز”)۔ تریہ وری پرون کلام۔

ممکن چھہ راہی سندۍ پننین نظمن تہ غزلن تلہ کنہِ دنہ آمتۍ تاریخ آسن صحیح۔ مگر واریاہن جاین چھہ شک جاے رٹان خاص کر ییلہ سہ رسالن منز کلام چھپاونہ خاطرہ سوزان چھہ تہ تمن تلہ کنہِ داہ داہ وری پرون تاریخ دوان چھہ۔ ممکن چھہ راہی آسہِ ہے نہ کنہِ وجہ کنۍ تازہ کلام نون کڈن یژھان یا کلام آسہِ ہے یوتاہ زیادہ زِ نوس آسہِ ہے ژیرۍ وٲرۍ یوان۔ نتہ آسہِ ہے مۅل ہرراونہ خاطرہ پتھ پتھ تھاوان۔ تحقیقچ شروعات چھیہ شکہ سیتۍ سپدان۔ وۅمید چھیہ کاشرِ شاعری ہندس تواریخس سیتۍ دلچسپی تھاون والۍ دوست کرن یمن معاملن کن غور۔ شفیع شوق سند "کاشرِ ادبک تواریخ” یودوے سیٹھا اہم کٲم چھیہ تہ سیٹھا فایدہ مند کٲم چھیہ، خاص کر طالب علمن ہندِ خاطرہ، سۅ چھیہ نہ یتھین معاملن واش کڈان یعنی تتھ منز چھہ تحقیق کم تہ تنقیدی تبصرہ زیادہ۔ کانہہ ونہِ یمن فروعی معاملن سنن گوو وقت راوراون مگر کنہِ تہ ادبک تواریخ چھہ نہ یمن معاملن کن توجہ کرنہ ورٲے مکمل۔ از چھہِ نہ اسۍ پننین پرانین شاعرن متعلق اپزو کتھو ورٲے کہنی زانان۔ حبہ خاتون چھیہ ارنہِ مال بنان تہ ارنہِ مال حبہ خاتون۔ ادبی تواریخ لیکھن وول اوس نہ کانہہ، ادبی تواریخ لیکھن وول چھہ نہ از تہِ کانہہ۔ مرغوب بانہالی چھہ اکس مضمونس منز کامل سنزِ "قصیدہ” نظمہِ کتابہِ اندر تلہ کنہِ دنہ آمتس 1970 تاریخس پیٹھ شک کٔرتھ لیکھان زِ "اتھ بعد زمانی پھیرس ہیکن پگہکۍ محقق پانے سام ہیتھ” حالانکہ یہ نظم چھیہ تمن برونہہ کنہِ نیب اکتوبر 1970 کس شمارس منز سرس چھپیمژ۔ "قصیدہ” ما اوس اکھ بیاکھ غزل یہ روزِ ہے نہ یاد۔ یتھ ادبی کمیونٹی یوتاہ مشرفہ آسہِ تہ ییژاہ لاتعلقی آسہِ، تتھ منز چھیہ ادبی مورخ سنز ضرورت زیادہ۔ کامل چھہ "یم میانۍ سخن” کتابہِ ہندس سرنامس منز لیکھان زِ "بٲتن الگ الگ تاریخ آسن چھہ نہ ضروری تکیازِ شاعری چھیہ نہ تٲریخواری مطٲبق مۅلون سپدان۔ وۅنۍ گوو فروعی معاملہ ونۍ راونس چھہِ کم کاسہِ مدد کران۔” کامل سنز کتھ چھیہ صحیح مگر حقیقت چھیہ یہ زِ یم فروعی معاملہ تہِ چھہِ اہم آسان۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s