تابانہ چہہ افتابہ مگر ہے قسمت


شیرازہ کس خصوصی شمارہ امین کامل نمبرس منز چھہ پروفیسر مرغوب بانہالی ین، کامل سنزِ قصیدہ نظمہِ ہند رسا جاودانی سندس پیش رو قصیدس سیتۍ اکھ تقابلی مطالعہ پیش کورمت۔ اتھ مطالعس منز یم نتیجہ کامل سندس قصیدس متعلق کڈنہ آمتۍ چھہِ، تمن ہنز تصحیح چھیہ کاشرِ ادبچ یہ شاہکار نظم (بقول محمد یوسف ٹینگ) سمجھنہ خاطرہ ضروری۔

مرغوب چھہ اتھ مختصر تقابلس منز زہ کتھہ برونہہ کن انان، بلکہ چھیہ یمے زہ کتھہ تقابلک مقصد تہِ۔ اکھ یہ زِ رساجاودانی سندۍ قصیدن چھیہ کاملس پنن قصیدہ وننچ تحریک دژمژ۔ دویم یہ زِ ییتہِ پیش رو  قصیدس منز بھدرواہ کہ حسنکۍ تعریف چھہِ، کامل سندس قصیدس منز چھہِ کشیرِ ہندِ حسنکۍ تعریف۔ ییتہِ ہُتھ منز 26 شعر چھہِ، یتھ منز چھہِ 41 شعر تہ امی تناسبہ چھہ اکھ بییہ کس «برونہہ نیران»۔ مرغوب سنزہ یم دۅشوے کتھہ چھیہ اکھ اکس سیتۍ تعلق تھاوان تہ دویم سراسر غلط۔

گۅڈہ تُلو اسۍ دویم کتھ۔ تمی منزہ نیرِ گۅڈنچہ کتھہِ ہند ژھۅژر۔ رسا جاودانی چھہ پننس قصیدس منز بھدرواہ چہ سرزمینہِ ہندِ حسنکۍ، اتہِ کین بسکینن ہنزِ خۅش خلقی تہ اتہِ کہ موسمہ چہ شادابی ہندۍ تعریف کران۔ یہ چھہ مرغوب سندۍ نے لفظن منز «وطن پرستانہ» قصیدہ۔ مگر کامل سندس قصیدس وطن پرستانہ ونن چھہ نہ صحیح۔ یہ دھوکہ چھہ مرغوبس اتھ قصیدس منز کشیر ہنزِ خوبصورتی متعلق کینژن شعرن ہنزِ موجودگی کنۍ لوگمت۔ سہ چھہ اتھ پورہ قصیدس نہ سنیومت تہ نہ چھین پننہ مقصد چہ جلد بازی کنۍ سمجھنچ کوشش کرمژ۔ کامل چھہ نہ کشیرِ قصیدہ لیکھان بلکہ «پننس پانس» یمہ کنۍ یہ قصیدہ پننۍ اکھ الگ اہمیت تھاوان چھہ۔ امہ قصیدک موضوع چھہ امہ کس گۅڈنکۍ سے شعرس منز نون:

تابانہ چھہ افتابہ مگر ہے قسمت
مۅغلن چھیہ پننۍ ژھانپ بہت دۅن چشمن

یعنی کامل سنز تخلیقی شخصیت چھیہ آفتابکۍ پاٹھۍ ادبہ کس آسمانس پیٹھ گاہ ژھٹان مگر افسوس زِ وچھنہ خاطرہ چھیہ نہ اچھ۔ اندۍ پکھۍ چھہِ راتہ مۅغل یمن پننین اچھن ہنز ژھانپھ امہ نظارہ نش محروم تھٲوتھ چھیہ۔ کامل چھہ برونہہ کن پننس پانس حق کس ظہورس سیتۍ مشابہت دتھ تہ وقتہ کین نمرودن پنن پان ژیتس پٲوتھ اتھ خیالس منز خیر وشرک تواریخی، روحانی سرینیر تہ تناظر پیدہ کران۔

گویا قصیدچ شروعات چھیہ یہ زِ خدایس اوس کامل زنمس انن۔ یتھ جایہ سہ زنمس اونن سۅ بنٲون تمس ظاہری حسنہ کنۍ شایان شان۔ امی تعلقہ چھہِ قصیدہ کس گۅڈنکس حصس منز کشیرِ ہندِ مارۍ منزرکۍ 8 شعر آمتۍ۔ کامل چھہ یمن تعریفن ہند وجہ یتھہ پاٹھۍ بیان کران:

ازلے ژیہ کورے مٲنزِ اتھو یمۍ شابش
تس ٲس خبر آسہِ یہ کمۍ سند مسکن 

امہ پتہ چھہ ینہ والین نون (9) شعرن منز  پننۍ تعریف کران ۔ مثلا:

اکھ جلوہ اگر ہاوہ متن ہتھ معشوق
کم اوش پننۍ بھول گژھن نوش لبن

بلۍ اچھرہ گیندن میون چھہ طرحن پھر پھہہ
ژھور میلہِ قلم میون چھہ کیا تاں ورقن

غم میون چھہ گل خندہ بشارت پگہچ
کُس زانہِ بہ کۅس زان کراں چھس حرفن

قصیدس منز چھہ کنہِ حدس تام اکھ ٹریجڈک صورت حالک ہیو ماحول پیدہ گژھان۔ اکھ جلال آور تخلیقی شخصیت، جاے تہِ تس شایان شان مگر وقت – وقت چھہ فن کہ لحاظہ ناموزون، قدر ناشناس۔ قصیدس منز چھہ پننیو تعریفو پتہ شین ستن شعرن منز وقتہ چہ ناموزونیژ ہند بیان۔

افسوس زِ ژھۅژہ کانۍ بنیم سرہنگ
شکرانہ میہ کن دھیان کمے تھوو ہوسن

نٹۍ نغمہ تہ کٹۍ ڈالہ چھہ تہذیبک رنگ
فن ہاوہ تہ کیا ہاوہ یتھس وقتس ون

خۅددار ضمیرن چھہ حکم کرتلہِ شرم
اعلان چھہ شیطان وچھتھ پیون سجدن

وقت سازگار نہ آسنکۍ، بے قدری یا بے توجہی ہنزِ شکایژ ہندۍ حوالہ چھہِ شاعرن نش کھلہِ میلان مگر تواریخی حوالو کنۍ چھیہ کامل سندِ قصیدچ معنی خیزی ہران۔ اتھ منز چھہ کامل بنی نوع آدم سنزِ تخلیقہِ ہندس واقعس کن اشارہ کرتھ کشیرِ ہشہِ مارۍ منزِ  جایہ جنت تہ دنیاہس سیتۍ، پننس پانس ظہور آدمس تہ وقتس شیطان سنزِ چالاکی سیتۍ استعاراتی واٹھ دوان۔ ٲخرس پیٹھ چھہ کامل پننہِ انا پسندی تہ کشیرِ ہنزِ شادابی گواہ بنٲوتھ پننس فنس منز اطمینان تہ بقا لبان:

چھس نار تہ نارس چھیہ نہ پوراں کانہہ ریہہ
چھس آب تہ آبس چھہ نہ دامن ادرن

یوت تام چھہ بترٲژ تہ افتابس سنگ
شاداب یہ ریشۍ وٲر تہ یم میانۍ سخن 

یہ چھیہ مختصر پاٹھۍ امہ قصیدچ تفہیم۔ امہ پتہ چھیہ نہ شکچ کانہہ گنجایش زِ کامل سندس قصیدس چھہ نہ رسا سندس وطن پرستانہ قصیدس سیتۍ کانہہ موضوعی تعلق۔ یمن ہندۍ موضوع چھہِ الگ۔ اکھ چھہ قدرتی نظارن ہنز تصویر کشی تہ بیاکھ قصیدہ کہ معیاری تعریفہ مطابق اکس با اثر شخژہ (کامل) سندۍ گۅن گیوان۔ لہذا چھیہ نہ مرغوب سنز 26 بمقابلہ 41 شعر تہ تمہ تناسبہ یمن قصیدن ہنز مان مان کانہہ مطلب تھاوان۔ وۅں گوو یہ کتھ چھیہ ضرور زِ یمن ہند وزن تہ قافیہ نظام چھہِ کنی۔ اتھ متعلق چھہ کامل ونان «وری واد برونہہ دژ میہ شاید مرزا عارف سندس وننس پیٹھ لال چوک وۅستہ کھار٭ سندس وانس منز رسا سندس مسودس نظر تہ کینہہ تعارفی سطرہ لیچھمس تتۍ نے۔» کامل چھہ مزید لیکھان: «رسا صابنۍ بیاض پران پران گوو امیک یہ مصرعہ میٲنس ذہنس اندر جاے گیر ‹یا یکھ تہ وچھکھ پانہ وناں کتھ جوبن›۔ وقتس سیتۍ گوو میہ مشتھے یہ مصرعہ چھہ کہند۔ کتھ آیہ تہ گیہ۔ مگر امہ پتہ واریاہ وری گژھتھ  ییلہ میہ قصیدہ نظم لیکھنۍ ہیژ یہ مصرعہ آم غیر شعوری طور برونہہ کن تہ بنیوو میانہِ نظمہِ ہندِ قافیہ نظامچ بنیاد۔»

اگر کاملن رسا جاودانی سنزِ دیکھا دیکھی منز قدرتی نظارن ہنز تصویر کشی کٔرتھ کشیرِ ہندس شانس منز قصیدہ وونمت آسہِ ہے، تیلہ بنہِ ہے رسا سند قصیدہ صحیح معنیس منز محرک۔ چونکہ کامل سند قصیدہ چھہ موضوعی طور بالکل مختلف، لہذا چھہ نہ یمن دۅن قصیدن درمیان ہیتی ہشرہ علاوہ کانہہ رشتہ۔ کاملن چھیہ پننہ قصیدہ خاطرہ رسا سندِ قصیدچ زمین تسندین ذہن نشین مصرعن ہندِ حوالہ ورتٲومژ تہ مرغوب بانہالی سندِ طرفہ امچ نشاندہی چھیہ پرن والین ہندِ خاطرہ دۅشونۍ قصیدن متعلق اکھ دلچسپ شیچھ۔ باقی یُس شعر لرِ لور تھٲوتھ یمن ہند تقابل کرنہ آمت چھہ سہ چھہ نہ یمن قصیدن متعلق کانہہ کتھ گاشراوان بلکہ مرغوب سنزِ شعر فہمی شک آور بناوان۔

شعوری طور یا غیر شعوری طور کامل سند پننہ قصیدہ خاطرہ بیۍ سنز زمین (وزن تہ قافیہ) ورتاون چھیہ پریتھ ادبہ چہ، خاص کر مشرقی شعری ادبہ چہ روایژ ہندین حدن منز اکھ عام کتھ۔ زمینن ہند ہیوت دیت چھیہ فارسی، اردو تہ کاشرِ شاعری منز اکھ مسلم حقیقت تہ اکھ مثبت روایت۔ نہ صرف چھیہ اکھ اکۍ سنزہ زمینہ، بلکہ مضمون تہ استعارہ حتی کہ پیکر تہِ یسلہ پاٹھۍ ورتاونہ آمتۍ تہ کالہ پگاہ چھہِ مرغوب سندِ دسۍ تہِ ورتاونہ یوان۔ شاعری ہند یہ موضوعی تہ ہیتی تسلسل چھہ متنن ہندِ حوالہ جاتی نظامک اکھ حصہ۔ یہ حوالہ جاتی نظام چھہ رسومیاتن، شعری ہیتن تہ تجربن/موضوعن ہنز اکھ شعوری تہ غیر شعوری کرۍ ہانکل یمہ سیتۍ ادبچ نہ صرف تخلیق بلکہ تفہیم تہِ ممکن سپدان چھیہ۔ امہ پوت منظرہ پتہ چھیہ مرغوب سنز یہ گراو زِ «ادبی دیانتک تقاضہ گژھہِ ہے پورہ اگر کامل صٲب کم از کم حاشیس منزے رسا صٲبنہِ تحریک دنک ذکر کرِ ہے» بے معنی بنان۔ گراو اگر صحیح تہِ مانون#، مگر محض امہ گراوِ مۅکھہ قصیدک غلط مفہوم پیش کرُن چھہ نہ صحیح۔

٭ بقول کامل وۅستہ کھار «اوس درویش حسابہ وانس منز آسان۔ کنن دنن نہ کہنی۔ دکان اوس پریتھ وزِ ادبی، سیاسی، مذہبی عقیدت مندو سیتۍ بٔرتھ آسان تہ پانوانۍ بحثہ مباحثہ کران۔ اڈۍ اژان تہ اڈۍ نیران۔»

# اگر بییۍ سنز زمین ورتاوتھ حوالہ دین ضروری چھہ تیلہ گژھہِ مرزا غالب یا باقی شاعرن ہندین غزلن پیٹھہ کنہ زمینہِ ہندین مالکن ہند ناو بطور حوالہ لیکھنہ یُن، تیلہ گژھہِ راہی سندین نصفہ کھوتہ زیادہ غزلن پیٹھہ کنہِ کامل سند ناو آسن۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s