شفیع شوق سند زنتہ غزل


zanta

راتھ گوو فیس بکس پیٹھ شفیع شوق سند اکھ نوو غزل پی ڈی ایف اٹیچمنٹ کس صورتس منز اچانک نمودار، تہ پی ڈی ایف کھلتھ رود واریاہس کالس دلس تہ دماغس آورٲوتھ۔ شوق سندۍ اکثر غزل چھہِ شعرہ پتہ شعرہ کھلان تہ پرن وٲلس مضبوطی سان پننس گرفتس منز نوان۔ امۍ چھہِ امہ برونہہ تہِ واریاہ غزل ونۍ متۍ یم یتھے پاٹھۍ دلچسپ، متاثر کن، معنی تہ ماحول پرور زمین (قافیہ تہ ردیف) کہ دریافتکۍ نمونہ چھہِ۔ غزل چھہ پیش:

زنتہ گندہ باشہ کراں آو سہ آدن زنتہ
زنتہ کیہہ تام دوپن چھکھ ژہ میہ واتن زنتہ

از تہ چھیہ زون پکاں سیتۍ ژیہ پاتھلۍ پرژھنم
زنتہ ببرایہ پھلتھ آیہ سۅ لامن زنتہ

لوب اوسس نہ، نہ کانہہ برم، اونکھ تہ ترووکھ
زنتہ پوک دور تہ ہیتھ آو سہ پانتھن زنتہ

آنگنہ چہ یارِ وری ساس گژھتھ بو ژھورس
زنتہ کاون وہاں بوو یہ شامن زنتہ

خوابہ منزۍ خواب منزۍ خواب وچھن کم چھا
زنتہ بر ووتھ چھہ گژھاں بند چھہِ ڈیشن زنتہ

بیون تہ نون روے ژیتس آو بیہ بتھۍ بیرِ اندر
زنتہ بازر نہ، گہل سرون تہ شہل ون زنتہ

از تہِ یخ بستہ چھہ موسم تہ گرم کل چھیہ مگر
زنتہ پھول سونتھ تہ مشکیوو زبر ون زنتہ

دوررکۍ پردہ ملاقاتہ طلب زورآور
زنتہ شوقس چھہ مژر ڈیشہِ یہ ہن ہن زنتہ

شاعری کیا چھیہ اگر نے یہ وضع کانہہ پھٹری
زنتہ گتہ گیور گندر معنہ تہ متنن زنتہ

میہ کٔر زمینچ کتھ۔ امہ غزلہ کس دویمس دویمس مصرعس منز چھہ غزلک کلیدی لفظ "زنتہ” دۅیہ لٹہِ اننہ آمت، شروعس منز تہ اندس پیٹھ۔ یۅہے چھہ امیک بل تہ ول۔ غزلکۍ سٲری تجربہ چھہِ امی زنتہ پیٹھہ زنم لبان تہ اتھۍ زنتہ ہس پیٹھ زایل گژھان۔ یہ ول چھہ امہ کین تجربن ہنز شدت پرن وٲلس کامیاب پاٹھۍ ژینناوان۔ قافیہ تہ ردیف چھہ باقین لفظن سیتۍ رٔلتھ /ن/ آوازِ ہند اکھ زبردست تکرار پیدہ کران یمہ کنۍ اتھ غزلس اکھ مخصوص صوتی کردار میلیومت چھہ۔ امیک ردیف ژھۅچہ آوازِ پیٹھ اند واتنہ سیتۍ تہِ چھہ یہ غزل الگ ہیو نیران۔ پتیمن دہن ورین منز گوو متحرک آوازن پیٹھ اند واتن والۍ قافیہ/ردیف ورتاونس منز ہریر یمہ کنۍ آہنگس منز خوشگوار تبدیلی ہند احساس گژھان چھہ۔ زمین کتھہ پاٹھۍ ہیکہِ غزلہ کس معنیس ہم آہنگ ٲستھ، یہ غزل چھہ امچ اکھ بہترین مثال۔ کیا چھہ وننہ آمت تہ کتھہ پاٹھۍ چھہ وننہ آمت، یم دۅشوے چیز چھہِ میانہِ خاطرہ مساوی طور اہم، مگر شوق سند یہ غزل چھہ ‘ کتھہ پاٹھۍ چھہ وننہ آمت’ چہ اہمیژ ہنز تہِ اکھ بہترین مثال پیش کران۔ شوق چھہ نہ یمن شعرن منز شاید تیتھ کانہہ تجربہ پیش کران یُس تمہ کہ ‘کیا چھہ وننہ آمت’ کہ وجہہ اہم آسہِ، حالانکہ شوق چھہ پننین غزلن منز سۅ کٲم تہِ آسانی سان تہ کامیاب پاٹھۍ کٔرتھ ہیکان۔ مثلا یہ شعر:

اپارِ کٹھہِ شبس بزم روز سحرس تام
یپارِ میون کُنیر ہُن، ہنیوو تور نہ اپور

امہ قسمکۍ شعر چھہ نہ عام طور غزلس منز میلان یمیک وجہ یہ چھہ زِ غزلہ کین تجربن ہند دایرہ چھہ اتھ صنفس سیتۍ یوتاہ مخصوص زِ تمہ نیبر نیرتھ چھہ شعری جمالیاتک مسلہ پیدہ گژھان۔ تنقید ٲسن، افسانہ ٲسن یا شعر، شوق سنز زبان چھیہ سیٹھا غیر آرایشی تہ واریاہن معاملن منز غیر استعاراتی تہِ ۔ سہ چھہ صرف اکھ صورت حال پیش کٔرتھ قاری یس آوراونک فن زانان۔

پانس پتہ ینہ واجنین پُیین منز اکہ طرفہ پنن آدن کال وچھن تہ سیتی دوشویی طرفو دوریر تہ واتنییارک مسلہ تہِ ژینن ، یہ چھہ گۅڈنکہ شعرک موضوع۔ شرس تہِ چھیہ پتاہ ز یہ شخص چھہ امس کیہہ تام واتان، کیہہ تام امہ مۅکھہ زِ پُیین ہندِ دورِرہ کنۍ چھیہ رشتچ نزدیکی تہ پہچان تہِ متاثر گژھان، یہ کیہہ تام چھہ متکلم سند طرفہ تہِ واتنیار کس مسلس کن اشارہ کران۔ ارادتا گرنہ آمتیو استعاراتی اظہارو نش چھہ شوق دور روزنچ کوشش کران، اگر شعر پانہ اکھ استعاراتی صورت حال پیش کرِ سۅ چھہ بیاکھ کتھ۔ سارنے شعرن ہنز تشریح چھیہ نہ ضروری تکیاز پریتھ شعر چھہ سیود سادہ لفظن ہند مرکب۔

کینژو شخژو کور یہ غزل فیس بکس پیٹھ نظرانداز شاید امہ کنۍ زِ اتھ منز چھہِ روایتی فارسی عروض کنۍ کینہہ مصرعہ پھٹان، یتھ سیتۍ میہ اتفاق چھہ، مگر زہ کتھہ چھیہ اہم، اکھ یہ زِ شوق سند شعر چھہ باوجود امہ معمولی کمزوری پننہ شعری قوتہ کنۍ متاثر کران، دویم یہ شوق چھہ شاید آہنگ کہ خاطرہ وزن صرف اکھ ریفرنس پواینٹ زٲنتھ ورتاوان۔ تمیک مطلب کیا گوو؟ تہِ فکرِ ترُن چھہ نہ یمن دوستن ہندِ خاطرہ ممکن۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s