پھیکس پیٹھ اتھہ – تریہ واقعہ


مستند تلفظ

آل احمد سرور اوس کشیمر یونیورسٹی ہندِ اقبال انسٹی چیوٹک سربراہ۔ شاید اوس میہ یمن دۅہن یونیورسٹی اندر ایم اے انگلشس منز داخلہ۔ آل احمد سرورن کور اکھ سیمنار منعقد یتھ منز نیبرمین اندرمین سکالرن سیتۍ رشید نازکی صٲبن تہِ مقالہ پور۔ سیمنارس منز ٲسۍ مسعود حسین خان تہ مدعو، یم ٲسۍ میہ علی گڈھہ استاد رودۍ متۍ۔

نازکی صٲبنس مقالس دوران اوسس بہ بۅنہ کنہِ یمنے نش بہت۔ یم ٲسۍ میہ سیتۍ اورچ یورچ کتھا کتھا کران۔ نازکی صٲبن اوس مقالہ پران پران یہ منظر وچھمت۔ سیمنارس ییلہ چایہِ ہندِ خاطرہ بریک میج، نازکی صٲب آیہ میہ نش تہ تھووکھ میٲنس پھیکس پیٹھ اتھہ تہ پرژھکھ ، "ییلہ بہ مقالہ پران اوسس یہ مسعود حسین خان صٲب کیا اوسے ژیہ پرژھان؟”

یمن ٲس نہ خبر زِ خان صٲب اوس میہ استاد۔

بہ اوسس یمن دۅہن رژھ کھنڈ شیطانی منز۔ میہ دوپ یۅہے چھہ موقعہ۔ میہ وونس، "کہنی نہ حض، یم ٲسۍ ونان یہ مقالہ پرن وول کس چھہ تہ میہ وونمکھ یم چھہِ کشیرِ ہندۍ نامور ادیب۔ تورہ حض دوپکھ نہ صرف چھہ یہند مقالہ عالمانہ بلکہ چھہ یہند تلفظ تہِ سیٹھا معیاری تہ مستند۔ میہ چھہ نہ کشیرِ منز یُتھ تلفظ کٲنسہِ وچھمت۔”

میون اوس یہ وننے یوت زِ نازکی صٲبن اون کنے وۅٹہِ میہ ٹیبلہ پیٹھہ چایہ پیالہ تہ دوپکھ، "رٹھ چیہ چاے”۔

اسۍ چھہِ دۅشوے کھڑا کھڑا چاے چیوان زِ نازکی صٲبس پییہ کس تام پیٹھ نظر۔ امۍ تھوو میہ پھیکس پیٹھ بییہ اتھہ تہ نیونس امس شخصس نزدیک تہ پرژھن، "اچھا کیا اوسے ژیہ یہ مسعود حسین خان ونان؟” میہ نی لفظ بہ لفظ پننۍ شیطانی دہرٲوتھ۔

نازکی صٲبن تروو یہ شخص اتی تہ نیونس بییس نفرس کن تہ پرژھن بییہ یۅہے سوال۔ میہ دوپ ہے ہے بہ کیا سا پھسیوس ولٹہ پاٹھۍ۔

امہ پتہ کینژس کالس ییلہ تہِ میہ نازکی صٲب کٲنسہِ شخصس تھی یونیورسٹی منز سمکھہ ہن، تم ٲسۍ میہ یوہے سوال پرژھان!

نازکی صٲبس چھہ پزۍ پاٹھۍ قابل رشک تلفظ!

"وچھ کیا جان!”

بیاکھ شخص یُس یونیورسٹی منز میٲنس پھیکس پیٹھ اتھہ تھاوان اوس، چھہ قاضی غلام محمد۔ فرق ٲس یہ زِ رشید نازکی صٲب ٲسۍ میون سویچ آن کرنہ خاطرہ پھیکس پیٹھ اتھہ تھاوان ییلہ زن قاضی صٲب شاید پنن سویچ آن کرنہ مۅکھہ میٲنس پھیکس پیٹھ اتھہ تھاوان ٲسۍ ۔

ملاقاتس دوران ٲسۍ یم غالب بوزناوان، اکثر فارسی یُس نہ میہ تمن دۅہن زیادہ سمجھ یوان اوس۔ یمن سیتۍ ٲسۍ پننۍ شعر تہِ بوزناوان۔ کتھ یۅس دہراونۍ لایق چھیہ سۅ چھیہ یہ زِ کنہِ تہِ شعرس پیٹھ میانہِ ردعمل برونہے ٲسۍ یم پانے ونان۔ "وچھ کیا جان! وچھ کیا جان! وچھ کیا جان!”

ملاقاتس دوران ٲسۍ یونیورسٹی گراونڈکۍ اکھ زہ چکر لگان یتھ دوران بہ شعرو کھوتہ زیادہ "وچھ کیا جان! وچھ کیا جان!” بوزان اوسس۔ ییژِ لٹہِ سمکھہو نوین شعرن سیتۍ ٲسۍ پرانۍ شعر تہِ بوزنۍ پیوان۔ شاید اوس نہ تمن یادے آسان زِ میہ چھہِ امہ برونہہ تہِ تمن سیتۍ یونیورسٹی گراونڈکۍ چکر لگٲوۍ متۍ۔

قاضی صٲبس ٲسۍ سیٹھا کھسۍ پایہ شعر یاد۔ وچھ کیا جان! وچھ کیا جان!

اور اس کے بعد میں

اکہِ رٲژ سیٹھا ژیرۍ ٲسۍ اسۍ کینہہ نفر زبیر رضوی سندِ گرِ راج باغہ نیرتھ لال منڈی کن پکان۔ میہ چھہ نہ یاد سانہِ اتھ چھۅکہِ منز کُس کُس اوس، البتہ شجاع سلطان اوس تہ تس سیتۍ فاروق آفاق تہِ۔ اسۍ چھہِ کمے پہن کتھہ کران، زیادہ کتھہ اوس شجاع کران۔ پیٹھہ اوس سہ مست۔ تھوون میہ پھیکس پیٹھ اتھہ تہ پرژھن، "پینٹنگہِ منز کس چھہ کشیرِ منز نمبر اول؟” میہ اوس نہ زانہہ امتحان خۅش کران۔ میہ دوپمس پتاہ چھم سا۔ دوپن، کیا سا چھکھ ونان۔ پینٹنگ میں نمبر اول شنتوش ہے۔ جی آر سنتوش۔ میہ تہِ اوس یۅہے ناو ذہنس منز آمت مگر وونمس نہ۔ ونہِ اوس میہ "آ "وننے زِ اتھۍ شہس منز وون امۍ "اور اس کے بعد میں۔”

کینہہ قدم پکٔتھ تہ خلقن پیٹھ تبصرہ کٔرتھ ووتھ یہ بییہ پھیکس پیٹھ اتھہ تھٲوتھ، ” کشیرِ منز کُس چھہ بوڈ شاعر؟” یہ سوال اوس ویسے تہِ مشکل۔ میہ کٔر ژھۅپہ۔ میہ دوپ فاروق آفاق ونیس۔ تمۍ تہِ وونس نہ کینہہ، کنہِ ووننس واریاہ چھہِ، یاد چھم نہ۔ شجاع ووتھ پانے۔ "کامل۔ امین کامل۔” فاروق آفاقن وونس شاید میانہِ مۅکھہ "تتھ کیا شک چھہ۔”

ونہِ اوس تس یہ جملہ ٲسہ منزہ درامتے زِ یہ ووتھ بییہ، "اور اس کے بعد میں۔”

یوتام اسۍ بیون بیون درایہ، امۍ ٲسۍ بییہ تہِ واریاہ "اور اس کے بعد میں” ونۍ متۍ یم وۅنۍ میہ یاد چھہِ نہ، فاروق آفاقس ما آسن یاد!

شجاع سلطان اوس سیٹھا ذہین تہ ہنرمند شخص یمۍ یمن دۅشونی خصوضیژن زیادہ کٲم ہیژ نہ۔

پھیکس پیٹھ اتھہ – تریہ واقعہ” پر 2 تبصرے

  1. Muzaffar Aazim
    ***
    اتھۍ شہس منز:
    1۔ احتشام حسین اوس محفلہ منز بہتھ تہ بہ اوسسامس نکھہ۔ دفتر اوس تعمیرک، تہ شاید اوس امی تعمیرک مدیر شمیم احمد شمیم تقریر کران۔ احتشام حسینس اوس تعمیر اتھس منز تہ اتھ ہیتن ورق پھرنۍ۔ مے گیہ رایہ مے ستۍ کتھ کتھ کران چھہ یہ میٲنی شٲعری ژھانداں۔ مے نیومس رسالہ اتھہ منزہ، ورق پھرۍ پھرۍ کودم پنن غزل تہ تھومس برونتھہ کنہ۔ خبر تنہ گوسا بلیغ کنہ نہ!
    پرتاپ پارکہ نشہ اوسس بہ اکس مشہور تہ معزز ادیبس ستۍ اکس بند وانہ چہ پینجہ پیٹھ کھڑا تہ لکہ ارساتس ستۍ شیخ محمد عبداللہ سندس تپٲرۍ نہرنس پراراں۔ ثیخ صٲب اوسکھ واریاہہ وہرۍ جومی کہ جیلہ منزہ تروومت ﴿شاید 1958﴾۔ اپٲرۍ جلوس پکنہ وزہ کر تمۍ درتھ اتھ بلڈنگہ کن نظر شاید امہ کنۍ زہ یہ ٲس تہندس جیل آسنہکس وقتس منز بنیمژ۔ میٲنۍ ستۍ بٲجۍ ادیبن وون "وچتھا کٲتس کالس رود یہ اسی کن وچھان”۔ مے وونمس نہ کہیں۔ لکہ ارسات منز ٲسۍ نہ اسۍ ژرہ سوب تہَ
    3﴾ یتھۍ چھہ واریاہ واقعہ یاد پیوان، ونہ کوتاہ، مگر اکھ توتہ: بہ اوسس اکہ دوہہ اکس تھدہ پایکا افسرس ستۍ بہتھ۔ سہ اوس اکس دویجنل انجینیرس ٹکریومت یمۍ بییس رتایرڈ انجینرس آنگنہ منز سہلابک آب کڈنہ باپتھ پمپ دنس ٹال مٹول کورمت اوس۔ امۍ اعلی افسن ونۍ نس کتھ یۅسہ مے ہمیشہ یاد روز تہ ہمیشہ روزیم یاد: دوپنس:
    پنننہ پننہ جایہ چھو سٲرۍ پادشاہ آسن۔ ﴿ یہ جملہ پرۍ زہ شرارتہ سان اسلام آبٲدۍ لہجس منز ، ادہ تری پورہ معنے فکرہ۔﴾

    پسند کریں

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s