شاعری ہند ترجمہ تہ تعریف: منیب الرحمن بنام رابرٹ فراسٹ


راتھ (20 دسمبر) سپزہ زہ کتھہ۔ سیٹھا ذہین فیس بک یوزر سبرین ملک کھول رابرٹ فراسٹ سند مشہور زمانہ مقولہ پننس والس۔ مقولہ چھہ "شاعری چھیہ تہِ یہ ترجمس منز راوان چھہ۔” میہ وچھ یہ تہ کٔرم لفظن گندتھ اتھ مقولس منز تبدیلی تہ کھٲلم دوشوے فراسٹ سند مقولہ تہ پنن لفظہ گیند پننس والس۔ میون مبدل اوس ونان: "شاعری چھیہ تہِ یہ ترجمس منز راوان تہ لبنہ یوان چھہ۔” اتھ پیٹھ ہیتِن کمینٹ ینۍ۔ تقریبا سٲری تی ونان یہ فراسٹن وونمت چھہ۔ مظفر عازم صٲبس اگر کنہِ پوسٹس سیتۍ برابری آیہ نہ تم چھہِ نہ تتھ لایک کران۔ تمو کور کمینٹ زِ امہ برونہہ زِ تم کرن اتھ لایک، منیب الرحمن یا بییہ کانہہ ہیکیا اتھ تبدیل شدہ شکلہِ مثال دتھ واش کٔڈتھ۔ عازم صٲب چھہِ تجربہ کار، تہ سینیر ترجمہ کار تہ یمن چھہ ترجمہ خاطرہ ساہتیہ اکاڈمی ہند ایوارڈ تہِ میولمت۔ بہ چھس اکثر گۅڈہ کتھ ونان تہ پتہ تمیک مطلب سوچان۔ میہ دوپ نسا وۅنۍ یہ بہ لیکھتھ گوس تہ تہِ،امیک دفاع کرن چھہ ضروری تہ لوگس سوچنہِ زِ فراسٹ سندِ مقولک یہ میون لفظہ گیند کیا کیا ہیکہِ بٲوتھ؟

بیاکھ کتھ سپز اتھۍ دوران یہ زِ فاروق شاہین سند مسیج ووت زِ تمن یس وعدہ میہ رسالہ خاطرہ مضمون دنک کورمت اوس، سہ کر گژھہِ پورہ۔ میہ اوس اقرار کورمت زِ اکس ہفتس منز سوزہ شاعری متعلق کانہہ مضمون (حالانکہ میہ چھہِ نہ مضمون لیکھنی تگان)۔ کینہہ اوسم نہ فکرِ تران زِ لیکھہ کیا۔ یم دۅشوے کتھہ اکی ساعتہ سپدنہ کنۍ آو میہ خیال زِ چھنا صلاح بہ لیکھہ پننس اتھۍ لفظہ گندس متعلق کینہہ سطرہ۔

٭٭٭٭
عام طور چھیہ یہ شکایت کرنہ یوان زِ ترجمس منز چھیہ شاعری راوان۔ اگرچہ اتھ منز واریاہ صداقت چھیہ مگر امیک مطلب چھہ نہ یہ زِ اسۍ کیا ہیکو نہ ترجمہ کٔرتھ یا ترجمس منز کیا چھیہ نہ شاعری ممکن۔ ایاز رسول نازکین اوس کمینٹ کورمت زِ شاعری چھیہ دراصل خاموشی یۅس اظہارس منز راوان چھیہ۔ یہ خیال چھہ شاعرو وزِ وزِ ورتوومت زِ زبان چھیہ اظہارس برونہہ کنہِ کم پیوان۔ مثلا کچھ اور چاہئیے وسعت مر ے بیاں کے لئے۔ اتھ منز کٲژا صداقت چھیہ۔ غالبن یہ کینژھا وون تمہِ علاوہ تہِ اوسا کینہہ یہ نہ سہ زبانۍ ہنزِ تنگی کنۍ ؤنتھ ہیوک، تہِ ماپنہ خاطرہ چھہ نہ اسہِ نش کانہہ پیمانہ، تاہم چھہ یہ خیال صحیح ماننہ یوان زِ زبانۍ چھیہ پننہ حدبندی۔ مگر امہ باوجود چھیہ نوین تخلیقی جہان ہنز دریافت شاعری منز جاری۔ ترجمک تہِ چھہ یۅہے حال۔ شکایت بجا مگر ترجمہ کاری چھیہ جاری تہ دنیاہچ واریاہ شاعری چھیہ ترجمہ کہ ذریعے اسہ تام واتان۔

Robert Frost(رابرٹ فراسٹ اکھ عظیم فن کار)

شاعری ہند اکھ تعریف چھہ نہ ممکن تکیازِ شاعری کتھ ونو اتھ متعلق چھیہ نہ بڈین بڈین نقادن ہنزو کوششو باوجود کانہہ حتمی را‎ے قایم سپزمژ۔ رابرٹ فراسٹ چھہ شاعری تتھ چیزس ونان یُس نہ اکہ زبانۍ پیٹھہ بییس زبانۍ منز منتقل سپدِ۔ اکھ مجرد تعریف۔ ظاہری سوتھرس پیٹھ چھہِ نہ لفظن ہند پننہِ زبانۍ اندر اشارتی مۅل، وزن تہ آہنگ، زبانۍ ہندین لفظن ہند مخصوص صوتی آہنگ، ردیف قافیہ بیترِ ترجمس منز منتقل سپدان۔ فراسٹ اوس پابند تہ مقفی شاعری کران۔ شاعری ہندۍ تم چیز یم زبانۍ یا کنہِ مخصوص فارمہِ تابع آسن چھہِ نہ ترجمس منز منتقل سپدان۔ چونکہ از کل چھہِ نہ واریاہ ادیب (مثلا رحمن راہی، شفیع شوق، بیترِ) شاعری خاطرہ یم چیز ضروری زانان لہذا کیا تمن چیزن ہنز منتقلی چھا ممکن یم یمو خصوصیتو بغیر لیکھنہ آسن آمتۍ؟ اگر اتھ تہِ جواب انکارس منز آسہِ، گویا ترجمس منز چھہِ نہ صرف یمے ظاہری چیز یم راوان چھہِ، بلکہ یمو علاوہ تہِ واریاہ کینہہ یس کنہِ تجربس یا متنس شاعری بناوان چھہ۔ ترجمس منز یُس چیز منتقل کرُن سہل چھہ، سہ چھہ خیال یعنی تفصیلی معنی۔ چونکہ نظمہِ منز چھہ خیالک دخل غزلہ کس شعرس مقابلہ زیادہ، امیک ترجمہ چھہ نسبتا آسان۔ نظم چھیہ اکثر خیالس منطقی زیچھر دوان یعنی اتھ منز چھہ خیالک پوچھر یمہ کنۍ یژھہِ نظمہِ ہند خیال منتقل کرن ممکن سپدان چھہ۔ شانتی ویر کولن اوس کمینٹ کورمت زِ شاعری ہند پوز امتحان چھہ ترجمہ۔ تہند مطلب چھہ شاید یہ زِ نظم گژھہِ ترجمہ کس امتحانس منز کامیاب سپدنۍ۔ واریاہ نظمہ چھیہ تم یم پزۍ پاٹھۍ ترجمس لایق آسان چھیہ۔ ازکل چھیہ زیادہ تر یژھے نظمہ لیکھنہ یوان۔ یعنی تم نظمہ یم ترجمہ کٔرتھ بییس زبانۍ ہندین پرن والین ہندِ خاطرہ تہِ معنی تھاوان آسن۔ یہ چھہ نہ ناممکن زِ ازکۍ کینہہ ناودار کاشرۍ شاعر (بہ زانن اکھ تمۍ سندی وننہ کنۍ) آسن پننہِ نظمہ گۅڈہ انگریزی پاٹھۍ لیکھان تہ پتہ تمن کاشر ترجمہ کٔرتھ بطور کاشر اصل پیش کران۔ یمن شاعرن ہند توجہ چھہ یتھ کتھہِ پیٹھ آسان زِ یہنزِ نظمہِ منز گوژھ نہ تیتھ کانہہ چیز آسن یُس ترجمس منز راوِ۔ یم چھہِ شاعری منز مقامیت بدلہ آفاقیت ژھاران۔ نظم چھیہ تمام مقامی زولانو نشہِ شاعری آزاد کرنچ کوشش۔ چونکہ شعری موسیقی چھہ زبانۍ تہ لسانی آہنگس سیتۍ تعلق، لہذا چھہِ نظم نگارن ہنز اکھ جماتھ اتھ "کنہ سۅکھ” (راہی) ؤنتھ باونہ بدل ہاونس پیٹھ زور دوان۔ یعنی یم چھہ آوازِ کھوتہ زیادہ شکلہِ پیٹھ بھروسہ کران۔ لسانی شکل چھیہ امیج خاص کر بصری امیج۔ آوازِ ہند ترجمہ چھہ ناممکن، شکلہِ ہند ترجمہ چھہ ممکن۔ امہ تبدیلی سیتۍ چھہ شاعری ہند صوتی یا زبانی کردار مٔشرتھ امیک تحریری کردار اہم بنان۔ شاعری چھیہ گیونہ تہ بوزناونہ کھوتہ زیادہ کاغذس پیٹھ پیش کرنک چیز بنان تہ وارہ وارہ سٔنتھ پرنک چیز بنان۔ شاعری چھیہ کنہ کھوتہ زیادہ اچھ ہند معاملہ بنان۔ مقامیت گیہ شاعری منز تم چیز ژھارنۍ یم اکس لسانی ماحولس سیتۍ مخصوص آسن تہ آفاقیت یمو چیزو نش دور روزُن۔

غزل چھہ مقامی شاعری ہنز مثال۔ امیک ترجمہ چھہ ناممکن نے تہ مشکل ضرور، خاص کر ییلہ اتھ منز خیالن یا مضمونن ہندِ سرینرہ بدلہ کیفیت تہ لہجہ کہ مدتہ پرن والۍ سند احساسی تہ فکری ردعمل وتلاونہ آسہِ آمت۔ یتے یوت نہ بلکہ خاص کر ییلہ لفظن منز ایہام یا کثرت معنی پیدہ کرُن مدعا آسہِ۔ غزلس منز چھہ ویسے تہِ شاعرن اکہِ کھوتہ زیادہ معنی ین منز لفظ ورتاونس مزہ یوان۔ امہ شاعری ہند تعریف چھہ فراسٹ سند مقولہ بنان۔ تاہم ونہ بہ واریاہن شعرن ہند ترجمہ چھہ ممکن ییلہ زن اکہ شعرک خیال تُلتھ سہ دویمہ زبانۍ ہندِ مزازہ مطابق لفظ بہ لفظ بدلہ نٔوس شعری اظہارس منز پھرنہ ییہ۔ اتھۍ وون میہ شاعری چھیہ تہِ یہ ترجمس منز راوان تہ لبنہ یوان چھہ۔ مثالہ پاٹھۍ نیتون یہ شعر:

دلبری ہند یہ ما چھہ کانہہ انداز
حال باوُن ہییمے ونکھ تُل تُل

یہ تہِ چھہ بنیادی طور ترجمے مگر یہ چھہ نہ بغیر شاعری، نہ چھہ یہ لفظ بہ لفظ ترجمہ۔ اتھ منز چھیہ نہ شاعری رٲومژ۔ ٹھیک چھہ اتھ منز چھیہ نہ ہوبہو سۅے کتھ تتھے پاٹھۍ آمژ یتھہ پاٹھۍ غالب سندس شعرس منز چھیہ، مگر اتھ منز چھہ غالب سندے خیال نِتھ شعر بناونہ آمت۔ ہوبہو منتقلی چھیہ نہ ترجمہ کیا اکۍ سے زبانۍ منز تہِ ممکن۔ یعنی یہ چھہ نہ ممکنے زِ اکوے شعر کیا ہیکون ہوبہو دویارہ ؤنتھ۔ یعنی اگر زبان تہِ اکاے آسہِ، شاعر تہِ اکوے آسہِ توتہِ چھہ نہ یہ ممکن زِ سہ کیا ہیکہِ کانہہ شعر دوبارہ ہوبہو ؤنتھ۔ گویا یہ چھیہ نہ صرف ترجمچ کمی بلکہ یمہِ کتھہِ ہنز زِ کانہہ تہِ خیال یا تجربہ ہوبہو دہراوُن چھہ نہ ممکن۔ فراسٹ سند مقولہ چھہ اتھ حقیقتس کن تہِ اشارہ۔ کامل سندس شعرس منز چھہ سہ چیز راوان یُس غالب سندس شعرس شعر بناوان چھہ، تاہم چھہ اتھ منز اکھ نوو مگر غالب سندس شعرس سیتۍ ہم آہنگ شعری صورت حال پیدہ گژھان۔ اکھ چیز چھہ راوان مگر اسۍ چھہِ بیاکھ چیز لبان۔ کامل سند بیاکھ شعر چھہ:

گل ورگہ اگر آو تہ کانہہ کانہہ خۅش بخ
کم جان تہ جانانہ چھہِ میژِ تل سۅسرن

یہ خیال چھہ نہ صرف غالب بلکہ تس برونہہ تہِ کٲتہو شاعرو ورتوومت۔ مثلا:
[مثالہ بییہ ساعتہ]

کامل سندس تہ غالب سندس شعرس برونہہ یودوے کتھ اکے چھیہ وننہ آمژ، کانہہ شعر چھہ نہ ہوبہو۔ خۅد خیالس منز چھیہ نہ کانہہ شاعری تکیازِ امہ شعرک مرکزی خیال ہیکون نثرس منز تہِ بیان کٔرتھ، مگر سہ آسہِ نہ شعر۔ شعر چھہ بہرحال زبانۍ ہندس ورتاوس منز۔ غلطی الگ یتھہ پاٹھۍ محمد یوسف ٹینگن غالب سندین شعرن ہندس کامل سندس ترجمس مںز ہاوِ مژہ چھیہ، پرفیکٹ یا مکمل ترجمہ چھہ ناممکن تکیازِ یتھہ پاٹھۍ پیٹھہ کنہِ وننہ آو، وۅپر زبان کیا اکۍ سے زبانۍ منز تہِ چھہ نہ لفظک نعم البدل بیاکھ لفظ موجودے۔ ترجمہ چھہ امپرفیکٹ کار یُس اتھ امپرفیکشنس منزے شاعری پیدہ کران چھہ۔ ترجمہ چھہ نہ نقل بلکہ بدل۔ عام طور یم ترجمہ اسۍ کاشرِ شاعری ہندۍ انگریزی زبانۍ منز کران چھہ، سہ چھہ دراصل اسہِ پننی خاطرہ آسان۔ اسۍ چھن سہ واپس پانے پران حالانکہ ترجمہ چھہ بییس لسانی کلچرس خاطرہ۔ تمن ہندِ خاطرہ گژھہِ سہ قابل قبول آسن۔ سانۍ شاعر چھہ پننین نگارشاتن ہند انگریزی ترجمہ وچھتھ خوش گژھان۔ تمن چھہ باسان امہ سیتۍ ہریوو تہندس کلامس مۅل۔ اصل تہِ چھہ پننسے کلچرس منز ترجمہ تہِ پننسے کلچرس منز روزان۔ امیک چھہ نہ کانہہ مقصد۔ یہ چھہ فن پارہ مۅلناونہ کین غیر ادبی معیارن منز شامل۔

ترجمچ بنیادی ضرورت چھیہ یہ زِ ترجمہ کرن وٲلس گژھہِ تمہِ زبانۍ ہنز سرنۍ واقفیت آسنۍ تاکہ اصلس منز موجود معنی کین تمام رنگن ہیکہِ مدنظر تھٲوتھ۔ یہ چھہ نہ ضروری زِ تمام رنگن گژھہِ سہ کۅم کٔرتھ ہیکُن مگر تمن پیٹھ نظر آسنۍ چھیہ ضروری۔ کاشرۍ ہیکن اردو پیٹھہ جان پاٹھۍ ترجمہ کٔرتھ تکیازِ اسہِ چھیہ اردو زبانۍ پیٹھ جان دسترس۔ اتھ ضرورتس سیتۍ سیتۍ چھہ یہ اصول اہم زِ ترجمہ کرن وول گژھہِ ٹارگیٹ زبانۍ ہند اصلی بولن وول آسن یعنی یہ گژھہِ تسنز مادری زبان آسنۍ۔ مثلا اسۍ ہیکو انگریزی پیٹھہ کاشرس منز ترجمہ کٔرتھ مگر کاشرِ پیٹھہ انگریزی یس منز ترجمہ کرُن چھہ سانہِ خاطرہ مشکل، تکیازِ یودوے اسہِ امہ زبانۍ ہنز بخوبی واقفیت چھیہ، اسہِ چھیہ نہ اتھ پیٹھ تخلیقی طور مادری دسترس، نہ چھہِ امہ کس روزمرہس واقف۔ یہ چھیہ سانہِ خاطرہ اکتسابی زبان۔ ٹارگیٹ زبانۍ منز چھیہ نہ مادری دسترسے یوت ضروری بلکہ گژھہِ موادس سیتۍ تہِ واقفیت آسنۍ۔ مطلب یہ زِ شاعری ہند ترجمہ کرن وول گژھہِ آیڈیلی پانہ شاعر آسن یا کم از کم شاعری ہندس فنس واقف آسن۔ ازکل چھیہ نہ دۅن لسانی کلچرن منز روزن تہ پریتھن والین ہنز کمی۔ یمے ہیکن کامیاب ترجمہ کرن والۍ بٔنتھ۔

اکھ فن پارہ یا شعر اکہِ زبانۍ پیٹھہ بییس زبانۍ منز منتقل کرُن گوو ترجمک عام تہ محدود تصور۔ بیاکھ تصور (میون ذاتی تصور) چھہ سہ یُس محمود گامی، رسول میر تہ تمہ زمانہ کین شاعرن ہنزِ کارکردگی منز نظرِ گژھان چھہ۔ تمو کٔر مخصوص شعرن ہنزِ ترجمہ کاری بجایہ/علاوہ فارسی زبانۍ ہنز شعری روایتے کاشرِ زبانۍ منز منتقل۔ تمو انہِ فارسی شاعری ہنزہ ہیئتہ، لفظیات تہ مضمون تہ تشبیہہ تہ استعارہ، عروضی نظام کاشرس منز۔ یہ چھہ ترجمک اکھ وسیع تر تصور یُس نہ امہ رنگہ شاید کنہِ زبانۍ منز پہچاننہ آمت چھہ۔ امی تصور منزہ چھیہ یہ کتھ نیران زِ کینژن صورت حالن منز کوتاہ اہم تہ ضروری چھہ ترجمہ بنان۔ یہ کتھ تہِ ترجمہ منزہ کتھہ پاٹھۍ چھہ واریاہ کینہہ راورتھ تہِ واریاہ کینہہ لبنہ یوان۔ یہ چھہ اکس سورونس یا اکی سے جایہ بند گمتس یا زمانس سیتۍ قدم نہ تلن وٲلس ادبس نٔو زندگی بخشان۔ میون ترمیم شدہ مقولہ چھہ اتھۍ حقیقتس کن اشارہ کران۔

اگر سنجیدگی سان وچھنہ ییہ تمام ادب چھہ ترجمے، چاہے سہ پتہ بییہ زبانۍ پیٹھہ ٲسۍ تن یا اکی زبانۍ ہندِ اکہ فن پارہ پیٹھہ بییس فن پارس تامک تخلیقی سفر، منتقلی در منتقلی۔ راونچ تہ لبنچ داستان!

٭٭٭٭
پیٹھمہ سطرہ تحریر کٔرتھ سوز میہ فاروق شاہینس رسالہ خاطرہ بدلے کیہہ تام۔ یمہ بہانہ لیوکھ سہ گوو بدل تحریر سیتۍ پورہ۔ مگر کینژس کالس رودس تس پرژھان اگر نہ سوزمت تحریر پسند ییہ بدل کینہہ سوزہ تیلہِ، خیال اوس یمے سطرہ سوزنک۔ تورہ جواب نہ بدل کینہہ سوزو، بدل کینہہ سوز مگر بییہ رود یہ سوزنے، لہذا کھالون بلاگسے۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s