کاغذ ودان آسن


sh

شوکت صوفی چھہ اکھ تازہ وارد یمۍ خاص طور نظم پننہِ اظہارک وسیلہ بناونک یرادہ کورمت چھہ تہ امیک ظاہر تہ بٲطن سرہ کھرہ کرنہ چہ کوششہِ منز لگتھ چھہ۔ عجیب کتھ چھیہ یہ زِ ییژ حوصلہ افزایی وۅتھہ ونس فن کارس درکار آسان چھیہ، تیژے چھیہ تمس تنقیدچ تہِ ضرورت۔ یم دۅشوے کامہِ اکی ساعتہ انجام دنہِ چھیہ دشوار تکیازِ پیٹھمس سوتھرس پیٹھ چھیہ یم کامہِ اکھ اکس مخالف۔ حالانکہ، اگر استعارہ چہ صورژ منز وچھو، نوو فنکار چھہ ادبچ نہالۍ یتھ حوصلہ افزایی تاپھ تہ تنقید سگ مہیا کران چھہ۔

شوکت صوفی یس چھیہ یمن دۅشونی چیزن ہنز ضرورت۔ مگر یپارۍ چھہ تنقید تہ تعریف دۅشوے سروگیمتۍ تہ فن کار دروگیومت۔ لہذا چھیہ امس پانے پننۍ وتھ بدِ کڈنۍ۔ یم کتھہ اوک طرف، فی الحال چھہ پیش امۍ سند اکھ تازہ غزل۔

غزل
شوکت صوفی

ژھاین نقاب ترٲوتھ گاشلۍ پکان آسن
واوس عجیب نیت صحرا وڈان آسن

باون اگرچہ گۅڈنیتھ خوابن بیہ دون تعبیر
تھاون حریر لٲگتھ پردن ژٹان آسن

شاید گژھاں چھہِ حاوی انہِ گٹۍ وۅں آفتابس
ژانگین ژہ رٲچھ کرۍ زے موکل یوان آسن

شہرس عجیب ژھۅپہ ہش دہہ چھس وۅتھان لیکن
چانین خراب حالن دل ونہِ دزان آسن

شامچ سہ زون تھاوی شاندس قریب ٲخر
ٲوج کتاب یتھ منز کاغذ ودان آسن

یہ غزل پٔرتھ چھہ احساس گژھان زِ شاعرس چھیہ امہ صنفہ ہندین لوازماتن پیٹھ نظر تہ سہ چھہ امہ چہ زبانۍ منز صوتی آہنگ قایم کٔرتھ ہیوکمت یُس غزلہ کہ خاطرہ اہم چھہ۔ وزن چھہ خوبصورتی سان ورتاونہ آمت، آوازن ہند دروبست تہِ چھہ متاثر کن۔ امہ وزنک آہنگ چھہ تفکراتی یُس غزلہ کس موڈس سیتۍ ہم آہنگ چھہ۔ غزلس منز چھہ نہ براہ راست معنوی نویر ۔ یعنی مضمون چھہِ تمے یم اکثر غزلن منز آسان چھہِ۔ مگر مضمون ادا کرنک یُس عام تعقلی طریقہ چھہ، تتھ برعکس چھہ شک گژھان زِ یمہ غزلک شاعر چھہ شعرن تہ مصرعن منز وۅپدن واجنین صرژن ہندس تاثراتی ماحولس زیادہ اہمیت دوان۔

بہ کورس "ٲوج کتاب” ترکیبہِ خاص طور متاثر۔ امہ تازہ ترکیبہِ سیتۍ چھہ شعر سیٹھا خیال آفرین بنیوومت، حالانکہ زونہِ سیتۍ "شامچ سۅ” فقرہ چھہ شعرس کنہِ حدس تام کمزور بناوان۔ غزلس منز چھیہ ژھاین نقاب تراونۍ، حریر لٲگتھ پردہ ژٹنۍ ہشہِ متاثر کن صرژہ اکھ نیک شگون۔

یمن پانژن شعرن منز چھہ صرف ڈۅڈ شعر تیتھ یتھ عام فہم پاٹھۍ فکرِ تروُن ونو۔ یہ ڈۅڈ شعر پچھانن چھہ نہ مشکل۔ شعر نمبر ژور پورہ پاٹھۍ تہ شعر نمبر تریہ اوڈ۔ باقی سٲری شعر چھہ معنیس یہ دپۍ زِ تہِ چلینج کران تہ پرن والس تفہیم بدلہ تخیل کس دنیاہس کن نوان۔ ذاتی طور چھس بہ یمہ کتھہِ ہند قایل زِ تخیلس تام واتناوتھ گژھہِ نہ شعر پوت کھوری ژلن بلکہ گژھہِ برونہہ کن پکنک آے رٹتھ تخیلس کامیاب پاٹھۍ کنہِ انسانی صورت حالس سیتۍ واٹھ دین۔ اگر یتھی ہوۍ تجربہ بارسس یِن، بے شک بنن تم غزلہ کہ موزونیت تہ مناسبتک جواز۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s