منظومہ

term

 

میہ وچھ سانۍ کینہہ نثر نگار چھہِ کینژن بٲتن ہندِ خاطرہ لفظ منظومہ ورتاوان۔ منظومہ لفظ چھہ عربی اصطلاح یُس نہ اردو والیو تہِ زیادہ ورتوو، تکیازِ تمو ورتٲو امہ خاطرہ امہ چی بدل شکل نظم۔

منظومہ لفظک ورتاو کو٘ر رحمن راہی ین شروع۔ امۍ لو٘ب یہ فارسی والین نش۔  فارسی والۍ چھہ اتھ ترین معنی ین منز ورتاوان۔ اکھ تمن بٲتن ہندِ خاطرہ یم عربی شعری صنفہ تہ عروض ینہ برونہہ ایرانس منز شاعری ہندِ رنگۍ لیکھنہ ٲسۍ یوان تہ یمن ہندۍ کینہہ نمونہ دستیاب ٲسن ہیتۍ متۍ گژھنۍ۔ یعنی یہ نہ غزل اوس، رباعی اوس، مثنوی بیترِ اوس تہ عروضس پیٹھ اوس نہ وننہ آمت۔  جدید دورس منز آو یہ لفظ  اتہِ نظم اصطلاح خاطرہ تہِ ورتاونہ۔ کانہہ تہِ چیز یُس نہ روایتی عربی فارسی صنفن منز اوس تتھ آو فارسی یس منز منظومہ وننہ۔ تریم معنی چھس نظام۔ کانہہ ترتیب دنہ آمت چیز۔ مثلا نظام شمسی۔  فارسی یس منز گو٘و یہ منظومہ شمسی۔

کاشرس منز چھہ اکھ اصل لفظ بٲتھ موجود یُس پرانین تتھین چیزن ہندِ خاطرہ ورتاونہ یوان چھہ یم نہ صرف گیونہ آسن آمتۍ بلکہ مخصوص عربی فارسی صنفن یا مخصوص اصطلاحن ہندۍ محتاج آسن نہ۔ اسہِ نش چھہ وژن تہِ بٲتھے۔ پرانہِ  کاشرِ شاعری (زیادہ تر ٲس لکہ شاعری اسہِ نش)  ہندِ خاطرہ اوس نہ کانہہ اصطلاح ورتاونہ یوان۔ شاعرن اوس نہ اتھ سیتۍ کانہہ غرض زِ یُس چیز تمو وو٘ن اتھ کیا ونو تاکہ یہ ییہ یتھوے باقی چیزو نش الگ کڈنہ۔ امہ رنگک تنقیدی شعور اوس نہ پرانین شاعرن۔ یہ شعور گو٘و فارسی دورس منز شروع۔ چناچہ چھہ گۅڈنچہ لٹہِ تتھ چیزس یتھ اسۍ از وژن ونان چھہ "غزل” وننہ یوان۔ یعنی وژن شاعر ٲسۍ پننس وژنس غزلے ونان۔ وژن اصطلاح آو جدید دورس منز ورتاونہ۔

از چھہ اسہِ نش واکھ، شروکۍ، وژن، غزل، مثنوی، رباعی، نظم اصطلاح موجود۔ نظم چھہ غیر روایتی شاعری ہندِ خاطرہ تہِ اردو والین ہندۍ پاٹھۍ ورتاونہ یوان۔ روایتی شاعری منز یُس چیز نہ پیٹھمین اصطلاحن پیٹھ وترِ تتھ چھہِ اسۍ بٲتھ ونان۔

یہ منظومہ کۅس بلاے چھیہ؟ کینہہ لوکھ چھہِ علم ہاونہ خاطرہ گو٘بۍ گو٘بۍ تہ غیر مانوس لفظ تہ اصطلاح ورتاون۔ یہ ما چھہ تموے لفظو منزہ؟

لیکسیفانسزم!!!

ژہ کمس کیا چھکھ ۔۔ اکھ غزل

Tsa kamis

فیس بکس پیٹھ لو٘بم پنن یہ غزل یُس فی البدییہ وننہ اوس آمت۔ از باسیوم اتھ منز کیاہ تام یمہ کنۍ دوپم تھاوون اورۍ بلاگس پیٹھ رژھرتھ۔

 

ژہ کمس کیا چھکھ کمۍ سند کُس
چھہ تمس تمۍ سند یمۍ سند یُس

ہُہ تہِ چھہ ہمس کیت ہمہِ یمہِ سان
بہ تہِ کُس کس کیت کھنہِ بوبس

کیازِ چھہ کمہِ مۅکھہ کِتھہ کنۍ کیا
آسہ تہ آسہ نہ، چھس نتہ چھُس

زاس نبس کوہ شنہ موہ کیات
زُتنہِ کیمین ہند کل اوسس

کیا چھہ کمس کس کیُتھ کوتاہ
یس یُتھ یوتاہ تس تیتھ  ترُس

یمۍ یمۍ ییلہ ییلہ تیلہ تیلہ زو
پھُس پھُس گُر گُر، گُر گُر پھُس

 

 

اوٚدر گلاب

sabz

 

کرتام لیچھییہ فیس بکس پیٹھ یہ نظمہِ ہنا۔ از لبم اچانک۔ تھاوون ییتہ نس رژھرتھ۔

 

دریاوس کھوٚت آب
دریاوس کھوٚت آب
تھرِ پھوٚل سبز گلاب
تھرِ پھوٚل سبز گلاب
دریاوس ووٚتھ آب
دریاوس ووٚتھ آب
تھرِ پھوٚل وۅزل گلاب
تھرِ پھوٚل وۅزل گلاب
چشمن منز اکھ خواب
چشمن منز اکھ خواب
تھرِ پیٹھ اوٚدر گلاب
تھرِ پیٹھ اوٚدر گلاب

__

محمد رمضان سند اکھ افسانہ ۔۔۔۔ ہالو

11295671_956700244381717_3298185407104550170_n

کتھے چھیہ روزان تہ کتھے روزِ۔ کتھ چھیہ یہ زِ بٹھہِ پیٹھ چہ زنانہِ ترٲو سمندرس کن نظر۔ سمندر کس نیلس رنگس کن نہ بلکہ مردس کن یمۍ سمندر کس آبس منز غوطہ دیت تہ ژھانٹھ وٲے تہ بیاکھ غوطہ دیت۔ پیٹھہ کنہِ گوو اکھ سمندری جاناوار نمودار تہ ہوہس پیٹھ پکھہ وہرٲوتھ ووتھ کھرِ بۅن تہ پتہ کھوت بییہ ہیور۔ سیٹھا ہیور کن گوو آسمانس منز غیب۔

مردس کن وچھنہ برونہہ ؤژھ زنانہ تہ کٔرن ہالو رٹنچ کوشش۔ تمۍ کوڈ پانس اکھ زیوٹھ مس وال، تتھ گونڈن اکہ اندہ اکھ پوش تہ بییہ اندہ بیاکھ۔ اکھ اند گونڈن اکس تھرِ تہ اتھ مس والس بنوون منزس اکھ حلقہ۔ تمۍ کٔر اکہ دۅیہ لٹہِ اتھ حلقس منز ہالو رٹنچ کوشش۔ تس گوو احساس زِ اگر مرد بییہ اندہ تھپھ کرِ، سۅ گژھہِ ہالو رٹنس منز کامیاب۔ سۅ آیہ واپس تہ وچھن بییہ مردس کن تہ دیتُنس آلو۔ "ہیا مردا، تھاوو وۅنۍ۔”

مردن دیت گوش۔ اکس جایہ ژاو آبس منز تہ بییس جایہ دراو نون۔ زنانہِ دیت بیاکھ آلو۔ "مردا، وۅلا یورۍ۔”

مرد دراو آبہ منزہ تہ ووت زنانہِ نش۔ "وچھتھہ میون دم؟ ”

مردن تھوو زنانہِ ہندین لنگن پیٹھ پنن کلہ تہ زنانہِ پھرِ مایہ بٔرتھ پننہ اونگجہ امۍ سندس مستس۔ مردس پییہ نندر۔ زنانہِ دیت آلو۔ "پییہِ نندر! وۅتھ تھود۔”

مرد گوو ہشارہ تہ پانسے سیتۍ کیاہ تام ہڑبڑٲوتھ نین سمندرکس آبس کن کنی دو تہ دیتُن اتھ منز بییہ اکھ غوطہ۔ زنانہِ کٔر بییہ ہالو رٹنچ کوشش تہ آیہ واپس تہ ترٲون مردس کن نظر یُس وۅنۍ نیلس آبس پیٹھ پننۍ تھر ترٲوتھ نرِ تہ زنگہ وایان اوس۔ زنانہِ دیت آلو۔ "مردا، وۅلا یورۍ۔”

مردن کور کینژس کالس ژھل مگر زنانہِ ہندس بار بار آلو دِنس پیٹھ کھوت آبہ منزہ تہ ووت زنانہِ نش۔ "کیا دلیل؟”

"پکھ ہالو رٹو۔”

مردن زن نہ بوزے تہ ترووُن امۍ سنزن رانن پیٹھ بییہ کلہ۔ زنانہِ ہیوت مایہ بٔرژو اونگجو امۍ سندس مستس پھش دیُن۔ مردس پییہ نندر۔ زنانہِ دیت آلو آلو۔ ییتہِ نس سمندری جاناوار آسمانس منز غیب گیوو، بالکل تمی سیدہ دراو اوبرہ منزہ اکھ دیو تہ بۅن ؤستھ لوگ زنانہِ اندۍ اندۍ گتھ دنہِ۔ زنانہِ دیت مردس بانبرِ ہوت آلو۔ "مردا مردا تھود ووتھ، ہشار گژھ۔ میہ چھہ کستام گتھ دوان۔”

مرد اوس مس نندرِ، اتھۍ سمندرس منز غوطہ دوان۔ اوبرہ دیون تُج زنانہِ نکھس تہ نین ہیور، سیٹھا ہیور اوبرس منز۔ مردس ییلہ نہ رانن ہند وشنیر تہ اونگجن ہند حیس ووت، سہ گوو ہشارہ تہ ژھٲنڈن زنانہ۔ تمۍ سوچ اگر زنانہِ ہند پتاہ کانہہ ؤنتھ ہیکہِ سمندری جاناوارس ورٲے نہ کہنے۔ یہ چھہ آسمانس منز وڈان مگر امس چھیہ پریتھ چیزس پیٹھ نظر آسان۔ مرد ووتھ سمندرکس آبس منز تہ رود امس جاناوارس پراران یوت تام سہ زیچھو پکھو ہوہس پیٹھ رکنہِ ؤستھ نمودار گوو۔ امۍ کورس سوال۔ "ژیہ ما وچھتھن زنانہ؟”

"آ، پیٹھہ کنہِ اوبرس منز۔”

مرد ژاو امس تیز رفتار سمندری جاناوارس منز تہ ووت اوبرہ دیوس تام۔ دیو اوس زنانہِ ہنزن رانن پیٹھ کلہ تھٲوتھ تہ زنانہ ٲس اونگجو سیتۍ تسند مس پھران۔ سمندری جاناوار بیوٹھ اکس اوبرہ لنگس پیٹھ تہ کٔرن زنانہِ اچھ ناٹھ ۔ زنانہِ دیت اوبرہ دیوس آلو۔ "اوبرہ دیوا، تھود وۅتھ۔ میہ وچھ اوبرہ لنگس پیٹھ سمندری جاناوار۔ امۍ کٔر میہ کن وچھتھ اچھ ناٹھ۔”

دیو ووتھ تہ سمندری جاناوارس کن نظر دتھ وونن۔ "دِس بیہنہ۔”

اوبرہ دیو شونگ دوبارہ۔ زنانہِ ٲس سمندری جاناوار سے کن وچھان۔ امۍ سنزہ اچھ آسہ وۅزجہ۔ امۍ آسہ نہ سمندری جاناوار سنزہ اچھ امہ برونہہ زنہے وچھمژہ۔ سمندری جاناوارن کٔر بییہ اچھ ناٹھ۔ زہ اچھ ناٹہ۔ زنانہِ دیت اوبرہ دیوس بییہ آلو۔ "اوبرہ دیوا، ہتا اوبرہ دیوا، یہ نا چھہ نہ جاناوار ۔ وۅتھو تھود۔ امۍ ہا کرِ میہ زہ اچھ ناٹہ۔”

اوبرہ دیون وون نندرِ منزے ۔ "کیا رووے، جاناوار چھا اچھ ناٹھ کران۔”

سمندری جاناوارہ منزہ دراو مرد نیبر تہ زنانہِ ہژس تھپھ کٔرتھ ژاو جاناوارس منز واپس۔ یم واتۍ واپس سمندر بٹھس پیٹھ۔ زنانہِ ژوٹ اکھ زیوٹھ مس وال۔ اکہ اندہ گونڈنس اکھ پوش، بییہ اندہ بیاکھ پوش۔ اکہ طرفہ روٹ مردن تہ بییہ طرفہ زنانہِ۔ منزس بنووکھ اکھ حلقہ۔ یتھے ہالو اتھ حلقس نش ووت، یمو لوم مس والس وارہ وارہ۔ حلقس منز لوگ ہالو۔ یتھہ پاٹھۍ روٹ یمو پنن گۅڈنیک ہالو۔ زنانہِ ژج کریکھ نیرتھ۔ "ہالو ہا لوگ!”

مردن تہِ دژ کریکھ۔ :اسہ روٹ ہالو۔”

پیٹھہ کنہِ گوو سمندری جاناوار وڈان وڈان نیلس آسمانس منز غیب۔

_______

افسانس پیٹھ تبصرہ:

فیاض دلبر: یہ چھہ واقعی پرن وٲلس گنڈتھ تھاون وول افسانہ۔ افسانہ نگار چھہ یقینا کہنہ مشق تہ تجربہ کار باسان۔ اکوے فی چھہ پیدہ گژھان۔ سہ گوو یہ ما چھہ وۅپر زمینہِ پیٹھ ووننہ آمت۔ کاش اتھ افسانس منز کاشرِ ماحولچ گراے آسنۍ۔

راجہ یوسف: میہ گوژھ گۅڈہ ہالوس (افسانک ناو ۔ ہالو) مطلق کانہہ ونن۔ یہ چھا سُے ہالو یُس کشیرِ منز دانیس بیہان چھہ تہ وۅٹہ تلان تلان اکہِ دانہِ کلہِ پیٹھ بییس دانہِِ کلِس تران چھہ۔ کشیرِ منز چھنہ مس والہ سیتۍ ہالو رٹنک رواج البتہ ٲسۍ پتھ کالہِ وال واش لگان، یہ ٲس گُرۍ دُمِچ یوان بناونہ، تہ امہ سیتۍ ٲسۍ کوتر، ککلہ تہ ژرِ بیترِہ رٹنہ یوان۔ عربس منز چھہ یہ سٹھاہ بوڈ آسان تہ امس چھہ اتہِ ٹِڈی ونان،یم چھہِ جُنڈس منز اسمانس منز وُڈان تہ امہِ وزِ چھہ اپارۍ اپارۍ زمینس انہِ گوٹ گژھان۔ یہ چھہ حلال۔ مگر وال واش چھنہ رٹنہ یوان۔ خبر یہ کتُیک ہالو چھہ یس مس والہ سیتۍ رٹنہ چھہ یوان ۔۔ گۅڈہ گوژھم یی فکرِ ترن زِ یہ کُس ہالو چھہ ۔۔کِنہ یہ چھہ بدل کینہ ؟

شکیل الرحمن: افسانہ آو واریاہ پسند، کم سے کم شاعری چھس نہٕ برتھ ۔۔۔۔ ہرگاہ افسانہ نگار کشیرِ منز روزان چھہ تہ ییتہ کس زمینس منز اسہِ ہن لیوکھمت جان گیوم۔ یتھ پاٹھۍ فیاض دلبرن اظہار کور۔ افسانہ لٮیکھن وول چھہ شاید سمندرن متاثر کورمت یا یہ ما چھہ نیبرے روزان۔

شاہد دلنوی: مہ تہِ آو افسانہ ہالو سیٹھاہ پسند تکیازِ افسانہ نگارن چھہ پزنہ پٲٹھۍ گۅڈہ اکھ ماحول پیدہ کورمت تہ پتہ اکھ تژھ کہانی ترتیب دژمژ یتھ الگ رنگ چھہ۔ لیکھنک منفرد انداز، کردارن ہنز منآسب ژٲر، ڈائیلاگن ہنز برجستگی ۔۔۔۔ سمندر، اوبر، مرد، زنانہ، دیو بیترِ علامژن ہند بر محل تہ استادانہ ورتاو۔ سورےکینہہ چھہ اکہِ کامیاب افسانچ دلیل۔ بڈِ پایہ چھیہ زبٲنۍ ہند افسانوی استعمال نظرِ تل تھاونہ آمت تہ بقول منیب صٲب وعظ خٲنی نشہِ لوب ہینہ آمت۔ واراہ کٲلۍ سپد کٲشرِ زبٲنۍ اندر اکھ بہترین افسانہ پرنک اتفاق ییمہ خٲطرہ فکشن رائٹرس گلڈ مبارک بادی ہند مستحق چھہ۔ یہ افسانہ پٔرتھ پیوو میہ سربرآوردہ افسانہ نگار سید یعقوب دلکش یاد یمو یتھی واریاہ علامتی افسانہ لیکھمتی چھہِ۔

منیب الرحمن: میہ پیوو نہ ہالوس مطلب ژھارن تکیازِ میہ پور افسانہ اکھ کہانی زٲنتھ، یتھ منز ہالوس ہالوے مطلب چھہ۔ اچھا سوال چھہ یہ کتیک ہالو چھہ؟ افسانہ چھہ بذات خۅد اکھ جاے بلکہ پنن اکھ دنیا قایم کران۔ یہ ہالو چھہ تمی دنیاہک۔ یہ ہالو سانس دنیاہس یا اندی پکھس منز ژھارن چھہ نہ ضروری۔ چونکہ افسانہ چھہ کٲشرۍ پٲٹھۍ لیکھنہ آمت، تمیک مطلب ما گوو یہ گژھہِ کشیرِ ہندس ماحولس ریفلیکٹ کرن۔

مظفر عازم: (انگریزی پیٹھہ ترجمہ) میہ پٔر کہانی تہ وۅمید چھیہ بییہ پرن کژِ لٹہِ۔ یہ چھہ بیان آمت کرنہ یتھہ پاٹھۍ کہانی پزِ سپدنۍ۔ یم پرن والۍ اتھ نیبرم، وۅپر بیترِ ونان چھہِ گژھن اکس لۅکچہ منز بند آسنہ کنۍ یلے تراونۍ۔ میہ پیوو اکھ دوست شاید سو مناتھ زتشی یاد یمۍ کلچرل کانفرنس کنہ کانگریس چہ میٹنگہ منز اکد افسانہ پور۔ بیانیہس منز اکس جیپہِ پیٹھ سپد سورے تنقید تہ وونکھ زِ جیپہِ ہند رنگ (یہ اوسا سفید) زانن چھہ ضروری زِ یہ جیپ چھہ یو این پیس والین ہنز۔ اسہ سارنے چھیہ پتاہ زِ دنیا آو نزدیک مگر یہ زاننس زِ یہ قطعہ زمین چھیہ سون مشترک قیام گاہ لگہِ کینہہ وقت۔

شکیل الرحمن: مگر یوت کٔرتھ تہِ چھہ خیالات پننس اوندپکس منز زنم لبان تکیازِ وسیع دٲیرس منز چھہ سون وجود راوان۔۔۔۔۔۔۔ تہٕ عام طور خواب پننہِ پرانہِ پہرِ منز نوِ زمانہ کٮ۪و کردارو سیتۍ سجاوان۔ سون ونن اوس ڈل تہ وۅلر تہِ ییہ ہا "ہالو” افسانہ سیتۍ بارسس۔ خیر سمندری گاڑ چھا مزہ دار کِنہ نہ یہ چھہ بحث طلب۔۔۔

منیب الرحمن: حقیقت چھیہ یہ زِ کٲشر ادب چھہ سیٹھا لوکلایزڈ ادب، امیک وجہ چھہ یہ زِ زبان تہ ادب چھہ صرف کشیر منز زندہ، مگر پتمین کینژن دہلین منز ہیوت امہ رنگہ امۍ واش کڈن۔ کینہہ زبان چھیہ کشیرِ نیبر تہِ بولنہ یوان تہ کینہہ ادب چھہ کشیرِ نیبر تہِ لیکھنہ یوان گو کہ زیادہ پہن چھہ تورہ کینے معاملن سیتۍ ونہِ آور۔ اگر بہ ادب تخلیق کرہ، سہ آسہ محمد رمضان سندۍ پٲٹھۍ یورہ کے تکیاز اسہ گوو واریاہ وقت کشیرِ نیبر۔ سون تخیل چھنہ کشیرِ کن وپھ تلان۔ اگر یہ افسانہ کاشرس یا اردوس منز آسہِ اتھ ونہِ نہ کانہہ ووپر تکیازِ تم ادب چھہِ نہ لوکلایزڈ ادب۔ کاشرین تہِ پزِ ادبس حض تلن یہ سونچتھ ز یہ زبان تہ امیک ادب چھہ وونۍ کشیرِ نیبر تہِ موجود۔ تہ کشیرِ ہندین سیاسی سماجی معاملن الگ تہِ ہیکن ادبکۍ معاملہ آستھ۔

شکیل الرحمن: یۅہے حال چھہ پریتھ زبٲنۍ ہند عالمی زبٲنۍ وغیرہ۔ تخیلس چھا واٹھ تخلیق کار سندس تتھ ماحولس سیتۍ یتھ منز سہ پریتھیومت آسہِ۔ اوند پۅک چھا سطحی طور اثر تراوان۔ کیسینو یا کلب ماحول ہیکہ ممبے ہندس تمس اثر انداز کٔرتھ تہ سے آسہِ تتہ کٮین مسلن انزۍ منزۍ گومت یُس تتھ ماحولس سیتی جڑتھ سہِ۔ آ، زینہٕ گرِ پٮ۪ٹھہ کنُہِ ماحولس منز پلنہ سیتۍ چھہ علاقایی ماحولک اثر ٹاکار پٲٹھۍ وۅتلان۔ ہالو افسانہ چھہ امہ کتھہِ ہند عکاس۔ ٹاکارہ پٲٹھۍ چھہ یہ کمس تام ایشٮین سند سوچ تہ تخیل۔ آ، سمندرن آسہِ متاثر کورمت۔

ہردے کول بھارتی: "ہالو” افسانس متعلق کینہہ وننہ برونہہ چھہ یہ ونن ضروری زِ بہ چھس نہ کانہہ ناقدانہ خیال یا رائے بلکہ خالصتا میانۍ ذاتی پسند تہ امہِ میزانہ کور میہ ہالو افسانہ خوش۔ یہ افسانہ چھہ گۅڈنچہ زہ تریہ لٲنہ پرۍ تھے دماغ آوراوان تہ ٲخری لٲن ختم گژھنہ پتہ تہِ آورِتھ تھوان تہ یتھہ پاٹھۍ چھہ سوچن تہ خیالن ہندِ عالمک اکھ (maze) ہیو کھلان۔ میانۍ کنۍ چھیہ یہے افسانچ کامیابی تہِ تہ خوبصورتی تہِ۔  زبان ورتاونس منز چھیہ افسانہ نگارن واریاہ لاپرواہی ورتٲومژ.

تنہا ردیفکۍ نفیس شعر

lone

فیس بک تنہا ردیف وٲلس مشاعرس پیٹھ یس تبصرہ اقبال فہیمن کور، تس چھہ پورہ پورہ حق کتھ کرنک، یمہ اندازہ تس خوش کرِ تمہ اندازہ۔ یُس نہ اقبال فہیمس ٹھیک پاٹھۍ زانہِ سہ گژھہ پریشان ہیو۔ ژکھ تہِ کھسیس۔

ییلہ بہ کینہہ فرماوان چھس، واریاہ چھہ تیتھ آسان یس نہ میہ ونن تگان چھہ تہ واریاہ تیتھ یتھ نہ کانہہ معنی نیران چھہ۔ یہ مسلہ چھہ نہ میونے اوت بلکہ شاید سارنے ادیبن ہند۔

اقبال فہیم نین کینژن کتھن سیتی چھہ نہ میہ اتفاق۔ مثلا لفظ تنہا۔ یم چھہ ونان امیک معنی چھہ نہ "الون (کنے زون)” بلکہ "الوف نیس، ودڈراول، ان کنسرنڈ، ڈیٹیچڈ”۔

بہ چھس ونان تنہا لفظک بنیادی معنی چھہ تی یتھ اقبال انکار کران چھہ یعنی اکیلا، جدا۔ باقی یم معنی امی درج کری متی چھہ، تم چھہ نہ بنیادی معنی بلکہ مختلف سیاقن ہند مطابق علاوہ معنی۔۔ یہ چھیہ شاعرس پننی مرضی سہ کتھ معنی یس منز ورتاوِ کنہِ لفظس۔

یمن شعرن منز تنہا کنہ تہ معنی یس منز ٲسۍ تن، یمن ہندس بہترین شعر آسنس کرہ نہ بہ انکار۔

محمد رمضان:
آسہِ کانہہ تارکھا وچھاں اسہ کن
گاشہ لومبکھ ژھٹاں ژھٹاں تنہا

مظفر عازم:
پوت کٹھس منز کھٹتھ تھواں تصویر
یوت نظر پوت نظر دواں تنہا

شانتی ویر:
تاپہ پھوتۍ ہیتھ ہپارۍ ژلۍ باپارۍ
ہردہ پن سانۍ پے وٹاں تنہا

شہناز رشید:
نجدہ ون کیازِ موٹھ وۅں درویشن
کیازِ پیوو شہر عاشقاں تنہا

فیاض دلبر:
ژۅن کٹھین ہند مکانہ کتھ لوگ وونۍ
دۅن شہن منز بہ چھس بساں تنہا

رفیق راز:
اندرہ کُس تام سرۍ یہ چھس پریزلان
شینہ مٲنیا چھیہ اکھ گلاں تنہا

رخسانہ جبین:
ٲنتھہ روستے سوال نظرو سیتۍ
ٲنہ اندری یہ کس پرژھاں تنہا

علی شیدا:
بالہ پیٹھہ وچھتہ زن پشس سیتۍ پش
آنگنن پھیر پریتھ مکاں تنہا

یتی نہ، پریتھ غزلس منز چھہِ اکھ اکھ زہ زہ شعر یم یمنے شعرن ہندۍ پاٹھۍ داد طلب چھہ۔ بہ ہیکاھ نہ ساری شعر درج کرتھ تکیاز میہ چھہ نہج رسالس تمن شعرن ہند انتخاب سوزمت۔

بہ ونہ بییہ اکہ لٹہ شاعر کتھ معنی یس منز ورتاوِ لفظس، تسنز مرضی۔

باقی یس الگ الگ شاعرن پیٹھ تبصرہ چھہ، تتھ متعلق چھہ نہ میہ کینہہ ونن۔ سو چھیہ اقبال فہیم صابنی راے۔ صحیح تہِ ہیکہ ٲستھ، غلط تہِ ہیکہ ٲستھ۔

شہناز رشید نس اکس غزل پیٹھ فیس بک گفتگو

(29-27اکتوبر 2013)

ghazla

نذیر آزاد: شہناز رشید چھہ سانہ زمانک نمائندہ شاعر۔ اوہند اسلوب چھہ بیون تہ سر تازہ تہ سیتی چھیس عروضس پیٹھ تہ سنۍ نظر۔میہ چھہ باسان زِ  یتھ غزلہِ منز ییتہ شہنازنہِ فکرِ ہنز ندرت ٹاکارہ چھیہ تتی چھہ سہ عروضی لحاظہ کیاہ تام نوو چیز ہیتھ آمت یہ نہ ونہِ میہ سمجھ یوان چھہ۔ میانہ حسابہ چھیہ یہ غزل بحر متقاربس منز۔ مطلعہس منز چھہ ” تہ” متحرک یس وزنس منز ” تی” یا ” تے” بنان چھہ ۔ یتھہ کنۍ  چھہ امیک وزن بنان فعولن ژورِ پھرِ۔( متقارب سالم)۔ مگر پریتھ شعرک گوڈنیک مصرعہ چھہ بنان فعولن فعولن فعولن فعل یۅس امچ محذوف صورت چھیہ۔ میون طالب علمانہ سوال چھہ یہ غزل چھا سالم کنہ محذوف ؟ یہ چھا رائج تہ جائز؟

منیب الرحمن: یتھے بہ کُنہِ جایہ عروض تہ املا لفظ وچھان چھس بہ چھس تھود گژھان وتھتھ۔ خبر یہ کیا بیمارۍ؟  گوڈنچ کتھ چھیہ یہ زِ یہ چھہ بہترین غزل۔ ینہ یہ  پہلو عروضی کتھن تل دبتھ گژھہِ۔ متحرک ردیف ورتاونہ کنۍ  چھہ فعولن سالم رکن فعول بنیوومت۔ شعرن ہندین گوڈنکین گوڈنکین مصرعن منز چھہ اکھ جاے ترٲوتھ (فعو) ورتاونہ آمت۔ میانہ خیالہ گژھہِ نہ یمن جاین سالم رکن تہِ ورتاونس کھوژن۔ وزنس پییہ نہ کانہہ فرق اگر فعول چہ جایہ فعو ییہ یا فعولن۔ اندس پیٹھ چلن تریشوے۔ کاشرس منز چھہ متحرک ردیف ورتاونہ سیتۍ  امکان ہران۔ میہ آو یہ غزل امہ رنگہ تہِ پسند۔

نذیر آزاد: گویا کہ کاشرس منزچھہِ یتھۍ  عروضی تجربہ کرنچ نہ صرف گنجائش بلکہ ضرورت؟

منیب الرحمن: دۅشوے۔ گنجایش تہِ تہ ضرورت تہِ۔

رفیق راز: لفظ ٲخرس پیٹھ امہ آیہ استعمال کرنس منز چھہِ واریا امکانات۔ونہِ لگہِ اتھ عام گژھنس وقت۔ شہناز صابنۍ  یہ غزل چھیہ ونہِ دویم کوشش۔ گوڈنچ ٲس شاید یہ: (ہتھیار وارہ وارہ چھہ تراواں بہار تہِ۔۔۔۔ہردک اثر قبول کراں گل عذار تہِ)۔۔۔(مشکیں خیال میانۍ چھِ چینکۍ غزال ھوۍ۔۔۔از میانہ ڈیڈہ تل چھہِ گدا گر عطار تہِ) ( نیب تہ فیس بک)

منیب الرحمن: راز صاب اتھ کتھہِ کڈۍ  تو گینۍ۔ کتھ چیزس لگہِ عام گژھنس وقت؟ توہۍ چھوا متحرک ردیفچ کتھ کران کِنہ کُنہِ مخصوص عروضی نکتچ؟

رفیق راز: منیب صاب یم الفاظ (تہ، بہ ژہ، سہ بیتر) چھہِ بنیادی طور دو حرفی (یعنی عروضہ حسابہ سبب) مگر اسۍ  چھک یم لفظ اک حرفی مانان۔ یمے لفظ دو حرفی ماننس لگہِ وقت۔کامل صا بس پتہ کٔر میہ تہِ یم لفظ دو حرفی مٲنتھ کوشش۔ وونۍ چھیہ شہناز صابن تہِ  قابل تعریف کوشش کرمژ۔بہ چھس مانان زِ یتین یم لفظ اکہ حرفی چھہِ استعمال گژھان تتین چھہ اسۍ  بنیادی طور اکہ حرفچ تخفیف کران یس عروضی حسابہ جائز تہِ چھہ، نتہ چھہ یمن لفظن منز دویم حرف ہائے مختفی۔میہ چھہ باسان وضاحت گیہ۔

بہ اوسس پراران زِ کانہہ ہییہ ھے اتھ عروضی سام۔ پریتھ شعرک گوڈنیک مصرع چھہ (فعولن فعولن فعولن فعل/فعول) تہ پریتھ شعرک دویم مصرع (فعولن فعولن فعولن فعولن) تہِ کیازِ (تہِ) چھہ دو حرفی میانہ حسابہ۔

شہناز رشید: شکریہ ، سیٹھاہ شکریہ تمہ آیہ کتھ کرنہ خاطرہ،یمہ آیہ میانۍ خواہش ٲس ۔ نذیر آزاد صاب عروضی معملاتن ہندِ حوالہ کتھ تلنہ باپتھ، تہ منیب صاب تہ راز صاب کتھ برونہہ پکناونہ باپتھ، نکتن واش کڈنہ تہ عروضی زاوۍ جارن تہ تجربن ووکھنے کرنہ خاطرہ توہہ ترشونی صاحبن ہند سۅ دلہ شکریہ ۔ یمن چیزن ہنز چھیہ  سخ ضرورت تہ یہ ضرورت ہیکہ صرف یہے نیب پیج پورہ کٔرتھ،،بلکہ یہ اکھ تحریک بنٲوتھ۔

نذیر آزاد: کامل صاب چھہ ” مس ملر ” (1955ع) مجموعس منز لیکھان ” یمہ نظمہ وننہ وزِ چھہ میہ شعوری طورمختلف صورژن تہ بحرن اندر تجربہ کرنس سيتۍ سيتۍ ۔۔۔۔۔۔” ۔ اتھ مجموعس منز چھیہ کامل صابنۍ  یژھ اکھ غزل تہ نظم شامل یتھ ٲخری حرف متحرک چھہ۔ غزلہ ہند مطلع چھہ ۔۔۔۔چھیہ نہ زندگی یمۍ  آسہِ کھیومت زخم کاری نہ/چھہ نہ زندگی واقف سہ دل یتھ بے قراری نہ۔۔۔ امہ باوجود چھس بہ یہ زانن یژھان زِ (1)ٲخری متجرک حرف مانوا اسۍ ژھوٹ آواز کِنہ زیٹھ ؟ (2) اکس شعرس منز ہیکہ وا اکھ مصرعہ سالم تہ بیاکھ محذوف بحرِ منز ونتھ ؟

رفیق راز: آزاد صاب میہ کو٘ر گۅڈے عرض زِ ( یہ، تہ، نہ، تہ، بہ) بیتر چھیہ زیچھہ آوازہ۔ یمن منز چھہ ہائے مختفی گپتھ۔ وونۍ گو٘و  ییلہ اسۍ  یم لفظ شعرس منز باگ چھہِ  استعمال کران تمہ ساعتہ چھہِ اسۍ  یہ ہائے مختفی دباوان یعنی اسۍ  چھہِ یمن لفظن تخفیف کران تہ اسہِ چھہ باسان زِ یم چھیہ ژھوچہ آوازہ۔ یہ تخفیف چھیہ غیر شعوری طور سپدان۔مانی تو یم چھہِ  اردو ( نہ، یہ) لفظن ھندۍ  پاٹھۍ  زیچھہ آوازہ تہِ تہ ژھوچہ آوازہ تہِ۔ عروضی لحاظہ ہیکن یم آوازہ منزس استعمال سپدنہ وزِ  ژھوچہ آوازہ بٔنتھ مگر ٲخرس پیٹھ استعمال سپدنہ وزِ  روزن یم زیچھہ آوازے تکیازِ  ٲخرس پیٹھ چھہ نہ تخفیف یوان کرنہ۔

مظفر عازم: رتن پورے بہتھ دوبۍ داتھرس پیٹھ
محی دینس کرو کتھ تارہ یکھنا
میہ پیو٘و  از یاد سہ اوسا اسہ غزل کِنہ وژن بوزناوان یمن یتھے کنہِ اندس پیٹھ متحرک حرف اوس آسان، دُحرفی اوس شاید پرنہ یوان ژہ بہ وغیرہ۔ میہ دو٘پ کٲنسہ پلوامہ کس ما آسہِ یاد۔

نذیر آزاد: راز صاب۔ میون موقف تہ چھہ یی زِ  ٲخرس پیٹھ آمژ متحرک آواز چھیہ سانہ آہنگہ مطابق زیٹھان تہ ٲخر چھہ ساکن گژھان۔ امہ لحاظہ چھہ نہ کامل صاب ،تہنز، شہناز صاب ( یژھہ کوششہ چھیہ بییہ تہِ کینژو دوستو کرِمژہ ) نین غزلن منز ٲخری حرف متحرک روزان۔میانہ خیالہ چھہ یہ فارسی/ اردوہکۍ پاٹھۍ سانہ زبانہِ ہندس مزاجس عین مطابق ۔ امہ منطقہ موجب چھہ شہناز صابن مطلع تہ باقی شعرن ہندۍ دویم مصرعہ سالم بحرِ منز۔ ییلہ زن یمن شعرن ہندين گوڈنکين مصرعن منز چھہ ٲ خری رکن ” فعو” یوسہ امچ محذوف صورت چھیہ۔ یہ صورت حال چھا روا؟

منیب الرحمن: یہ چھہ اکھ دلچسپ، تہ زیوٹھ بحث۔ عازم صاب چھہ صحیح فرماوان (عازم صابن کمینٹ یتھ کن یہ حوالہ چھہ، چھہ ڈلیٹ گومت۔ شاید تمو پانہ کورمت)۔ اندس پیٹھ متحرک لفظ چھہ لل دید، شیخ العالم تہ تمن پتہ تہ واریاہو شاعرو ورتوومت۔ مگر تم  ٲسۍ نہ فارسی عروض ورتاوان لہذا اوس نہ تمن کانہہ مسلہ، خاص کر واکھن منز۔ وژنن منز اگرچہ متحرک لفظ اندس پیٹھ ورتاونہ آمتۍ  چھہِ، اکثر جاین چھہِ لیہ ہندس زیچھرس سیتۍ  زیٹھراونہ آمتۍ ۔ "بہ” چھہ بنان "بو”۔ عربی عروضس منز چھہ متحرک لفظ ٲخرس پیٹھ ورتاونہ یوان تکیازِ تم چھہِ عروضس منز تنوعکۍ قایل۔ فارسی تہ اردوس منز چھہِ زیادہ سخت اصول۔ مثلا یہ زِ  اندس پیٹھ ییہ نہ متحرک لفظ (یتھ کن راز صابن پیٹھہ کنہِ اشارہ کو٘ر)۔ کینژھا چھہ امیک وجہ یمن زبانن ہندۍ لفظ۔ کاشرس منز چھہ ٲخرس پیٹھ متحرک لفظ ینک زیادہ امکان۔ اتھۍ  کن وچھتھ اوس کامل صابن یہ تجربہ کو٘رمت۔ راز صاب چھہِ ونان ز ِ”ٲخرس پیٹھ چھہ نہ تخفیف یوان کرنہ۔” یہ چھہ عروضی اصول یس کاشریو نہ بلکہ فارسی والیو بنوومت چھہ، عربی یس منز چھہ اتھۍ  عروضس منز ٲخرس پیٹھ تخفیف یوان کرنہ۔ کاشرۍ  لفظ "بہ” ، "تہ”، ژہ” چھہِ نہ زیچھہ آوازہ، املا ہس کُن مہ گژھو۔ حروف ملفوظی تہ مکتوبی بحث آسہِ توہہ یادے۔

فارسی تہ اردوس منز چھہ نہ "کہ” کاشرۍ  پاٹھۍ  "کِ” بولنہ یوان بلکہ "کے” یعنی تمن نش چھیہ یہ زیٹھ آواز، اسہِ نش نہ۔ اسہِ نش گیہ یہ ژھوٹ آواز۔

مظفر عازم: روایتک احترام کُرن چھہ پریتھ معزز شہری سند فرض۔ روایتس تلک پیٹھ کُرن چھہ پریتھ صاحب ایجاد سند فرض۔ پگاہ کیا چلہِ تہ کیا نہ، تہِ کُس آو وچھتھ ۔ چھِٹھ چھیہ لاگنۍ پننہ مزازہ۔
غزلہ ہن چھے نفیس، شوقہ سدرس چھہ وسن۔
اگر ریوایت نواز خوش کرنۍ  چھہِ، تیلہ گو٘و  گۅڈنیک مصرع "تہ” ورٲے لیکھن۔ تکیازِ وۅستو دو٘پ مطلع چھہ غزلہ کہ عروضک رۅخ مقرر کران۔ ﴿یہ تہ وۅستو زِ غزل ہیکہ مطلع ورٲے تہِ ٲستھ ۔﴾ شاعری تراو تہ، میہ چھہ نہ عام زندگی منز تہِ روسومن ہنز غلامی پسند، مگر کھیلس سیتۍ تہِ چھہ پکن، سوال چھہ صرف کمہِ وقتہ کیا چلہِ۔

فیس بک طرحی مشاعرس پیٹھ تبصرہ

 

شرکا: رفیق راز, شانتی ویر کول, ایاز رسول نازکی, برجناتھ بیتاب, شہناز رشید, خالد بشیر, محمد رمضان, علی شیدا, نثار عظم, ظفر مظفر, الیاس آزاد

 

یہ تبصرہ چھہ  فیس بک کٮن گۅڈنکٮن دۅن مشاعرن منز  (2011) فی البدیہہ، لگ بگ فی البدیہ تہ فرصت سان وننہ آمتین غزلن پیٹھ۔ یمن مشاعرن منز نیو کہنہ مشق کیو تازہ وارد  شاعرو برابر دلچسپی سان حصہ ۔ تریمس مشاعرس منز مظفر عازم سنزِ شرکژ سیتۍ ہریوو اتھ سلسلس وقار۔

غزلس منز چھیہ ذاتی تجربن زیو دنچ کمے پہن ریوایت۔ زیادہ تر چھہ یہ مضمون آفرینی سیتۍ آوراونہ آمت تہ اکثر چھہ یمن مضمونن ہندۍ محرک قافیہ تہ ردیف رودۍ متۍ، یمہ کنۍ اتھ صنفس منز اکھ اجتماعیت تہ اکھ یکسانیت پیدہ گژھنک خدشہ روزان چھہ۔ حقیقت چھیہ یہ زِ مخصوص طرز تہ مخصوص نکتہ نظر تہِ چھہ کمنے شاعرن باگہِ یوان۔ غزلس چھیہ اکثر نوِ زمینہ تہ نوۍ ردیف قافیہ نہ صرف تازہ دم کران بلکہ امکان تہِ  بخشان۔ یمن غزلن منز   تہِ چھہِ امہ رنگۍ کینہہ تجریہ میلان۔ اکھ تجربہ یعنی متحرک حرفس پیٹھ اند واتن وول قافیہ/ردیف چھہ بیک وقت عروضس سیتۍ تہِ تعلق تھاوان۔ فارسی اردو عروضی مشقہ کنۍ  چھیہ نہ مصرعہ کس اندس پیٹھ متحرک حرفس کانہہ جاے۔ امہ بندشہ کنۍ ٲسۍ نہ کاشر ۍ غزل گو تم بے شمار قافیہ/ردیف ورتاوان یم یک حرفی لفظ چھہِ تہ متحرک الاخر چھہِ۔ مثلا بہ، ژہ، تہ، تہِ، ہہ، بیترِ ۔ یتھے پاٹھۍ چھہِ بے شمار فعل تہِ مثلا کرہ، کرِ، گژھہ، گژھہِ، ونہِ، روزِ، روزہ، بیترِ۔وژنن منز ٲس نہ وزنچ کانہہ بندش مگر اتھ منز ٲسۍ گیونہ کنۍ ژھوٚٹٮن مصوتن پیٹھ مشتمل لفظ زیٹھراونہ یوان۔ خال کنُہِ لل واکھس، شیخہ شروکس منز یا نایاب پاٹھۍ کنہِ وژنس منز چھہ متحرک آوازِ پیٹھ مصرعہ اند واتان۔ امین کاملن کوٚر غزلس منز یہ تجربہ  ابتدایی دۅہنے منز تہ تمہ پتہ رود سہ یم متحرک قافیہ/ردیف والۍ غزل منزۍ منزۍ ونان مگر تس ورٲے تل نہ اتھ خاص پاٹھۍ کٲنسہ فایدہ ، حالانکہ اتھ منز چھہِ سانہِ زبانۍ ہندِ نسبت واریاہ امکان موجود۔ اتھ تجربس تُل پتمین شٮن ستن ورین دوران محمد رمضانن فایدہ۔ تمۍ لیکھۍ غزل ہا یمن ہندۍ قافیہ/ ردیف متحرک حرفن پیٹھ اند واتان چھِہ (مطبوعہ نیب)۔ تمۍ ورتاوۍ متحرک حرفن پیٹھ اند واتن والۍ فعل تہِ ردیفن منز۔ مثلا:

رنگ برگن چھکہِ، خوشبو ژھٹہِ، دل شاد تہِ کرِ
تیتھ تہِ کانہہ پوش یمس باد صبا یاد تہِ کرِ  (محمد رمضان)

یوٚہے تجربہ نظرِ تل تھٲوتھ دیت میہ متحرک مصرعس پیٹھ اند واتن وول اکھ طرح، اردو شاعر فرحت احساس سندِ اکہ اردو مصرعک ترجمہ

ہتٮن ہہ دشت مسلسل یتٮن مسلسل بہ

اتھ پیٹھ آیہ کم از کم 7 غزل وننہ یمو منزہ تقریبا سٲری فنی تہ معنوی لحاظہ سیٹھا مارۍ مندۍ چھہِ۔ یمن غزلن منز چھہ اتفاقا تقریبا پریتھ شاعرن گاش، ژونگ، واو استعاراتی طور مختلف معنی برآمد کرنہ خاطرہ ورتاوۍ متۍ تہ یم چھہِ پزۍ پاٹھۍ پننہِ پننہِ غزلہِ منز بہترین شعر:

رفیق رازہ مٮہ نارس اندر زمانا گوٚو
نہ تیز دروتھ بناں چھُس نہ تیز کرتل بہ  (رفیق راز)

میہ روٚس نہ کانہہ تہِ اکھا واوہ ہالہِ زالاں ژونگ
گوٚمت خدایہ ظہرۍ پورہ پاٹھۍ پاگل بہ  (شہناز رشید)

چھہ میون شہہ تہِ گوٚبے میانہِ براندہ کس ژٲنگس
ژہ سونچ پانہ زِ واوس ہیکا کڈتھ کل بہ  (برجناتھ بیتاب)

چھہ گاشہ نوو ژ‎ۅاپارۍ اچھ کٔرتھ ژرژان
چھکن کپارۍ الہی یہ رٲژ ہند ملبہ  (محمد رمضان)

وچھاں یتھے بہ چھُسن آنگنس اژان یہ گاش
دوان تارۍ برس چھس تہ دارِ ہانکل بہ  (نثار عظم)

ہہ گاش ییہ تہ خبر ہییہ نہ رٲژ پہرن تام
فضول دارِ پٹٮن کیازِ تھاوہ ہانکل بہ  ( الیاس آزاد)

رفیق راز سندس شعرس منز اگرچہ گاشک استعارہ ورتاونہ چھہ نہ آمت مگر نارچھہ بہرحال گاش تہِ ژھٹان۔ اتھ شعرس منز چھہِ بیک وقت زہ متضاد مضمون۔ گۅڈنچہ نظرِ منز چھہ باسان زِ متکلم چھہ نارس منز ٲستھ تہِ نہ دروت بنان تہ نہ کرتل، مگر "تیز” لفظہ چہ کلیدی حیثیژ کن وچھتھ چھہ یہ مضمون برونہہ کن یوان زِ نار ہیکہِ درٲتس یا کرتلہِ  آکار دتھ مگر تیز ہیکیکھ نہ بنٲوتھ، چاہے تم کٍتس تہِ کالس اتھ اندر تپاونہ یِن۔ یہ چھہ "ساری دراے پۅختہ تے بے دراس اوم”  کہ قبیلک اکھ نفیس مضمون ۔شہناز سندس شعرس منز چھیہ ناسازگار حالاتن منز کوشش کران روزنچ کتھ یۅس امہ کنۍ بظاہر پاگل پن باسان چھہ تکیازِ یہ شخص چھہ اتھ عملہِ منز کُنے زوٚن۔ ساری چھہِ لوٚب کتھتۍ متۍ۔ یہ مضمون تہِ چھہ نہ نوٚو البتہ موجودہ حالاتن مدنظر چھہ برمحل۔ برجناتھ بیتابن چھہ پننس شعرس منز اکھ بالکل نوٚو مضمون اوٚنمت یمہ مطابق ژونگ اکہ نوزک روایژ ہند استعارہ بنان چھہ یُس امس شخژہ سند گرہ روشن کٔرتھ  چھہ۔ اتھ روایژ چھہ امس شخژہ سنزو زندہ روزنہ چیو پننیومجبوریو کنۍ تہِ خطرہ لاحق۔ یمس شخژس امہ روایژ ہند یوت خیال آسہِ زِ سہ کرِ یہ دپۍ زِ تہِ شہہ ہینس پیٹھ تہِ ضبط، سہ کتھہ پاٹھۍ دِیہ تتھٮن اسبابن دعوت یم اتھ روایژ پورہ پاٹھۍ ژھیتہ نِن کٔرتھ۔ امہ مضمونچ عذرخواہی چھیہ بیتابس اکس خاص صورت حالس پیش نظر سنیمژ یس اسہِ سارنی ویوٚد چھہ۔ محمد رمضان سند شعر تہِ چھہ بیتاب سندِ شعرکۍ پاٹھۍ اکھ نوٚو مضمون ہیتھ۔ مگر اتھ منز چھہِ گاشچ پرسانفیکیشن (اچھ کٔرتھ ژرژان) تہ "رٲژ ہند ملبہ” ہش اختراع کرنہ آمژ ترکیب تہ امکۍ استعاراتی معنی زیادہ توجہ طلب۔ رمضانن چھہ پننس غزلس منز غلبہ/ طلبہ/ملبہ ہوۍ قافیہ ورتٲوتھ جدتس کٲم ہیژمژ۔ یہ شعر چھہ معنوی طور مبہم تہ فکرمندی ہنز دعوت دوان۔ متکلمس چھہ منہدم رٲژ ہند ملبہ بار گراں بنیوومت یس نہ تس نیبر کن چھکنس وار چھہ۔ امچ شکایت خدایس کن کٔرتھ چھیہ امچ معنوی تہہ داری ہران۔ نثار عظم سندس شعرس منز چھیہ نہ فکرمندی مگرامۍ تہِ چھہ گاش رمضاننۍ پاٹھۍ شخژوومت تہ شعرس منز اکھ نوٚو مضمون تہ معنوی امکان پیدہ کرۍ متۍ۔ گاشس سیتۍ "یہ” لفظک ورتاو چھہ توجہ طلب۔ اکثر چھہِ یتھۍ ہریمانہ لفظ وزنہ برابری خاطرہ تولس تراونہ یوان مگر یہ شعر چھہ امۍ لۅکٹۍ لفظن کتہِ کور واتنوومت۔ شعرس چھہِ کم از کم زہ معنی ممکن۔  یہ گاش چھہ نہ عام گاش یا سہ گاش یمچ توقع چھیہ بلکہ تیتھ گاش یتھ متکلم "یہ گاش” ؤنتھ لگ بگ طنز کران چھہ۔ متکلم چھہ نہ اتھ قطعا گرس اندر دعوت دنہ خاطرہ تیار۔ غیر طنزیہ معنی ہیکیس یہ نیرتھ زِ متکلم چھہ نہ گرہ کٮن سِرن ننیر گژھنہ کہ خدشہ کنۍ گاشس اندر ینچ کانہہ وتھ دوان۔ دۅشونی صورژن منز چھہ یہ شعر المناک صورت حال پیش کران۔ نثار عظم سند شعرس قریب چھہ الیاس آزادن شعرمگر اتھ منز چھہ اتھ مخالف مضمون گنڈنہ آمت یس سیٹھا دلچسپ چھہ۔ یہ مضمون تہِ چھہ نوٚو تہ نایاب تہ اکھ تیتھ صورت حال خلق کران یس سیٹھا معنی آفرین چھہ۔ امہ خدشہ زِ گاش ہییہ سانٮن رٲژ پہرن تام حساب، چھہِ اسۍ بلیک آوٹ کٔرتھ ینہ والہِ وقتکۍ امکان پانس پیٹھ حرام کٔرتھ نوان۔ یہ چھہ اکھ بہترین مضمون۔

یم ساری شعر پٔرتھ چھہ یقین سپدان زِ سانۍ نوۍ نوۍ شاعر چھہِ نہ صرف نوٮن استعارن تلاش کران بلکہ پرانٮن استعارن منز تہِ نوۍ امکان تہ نوۍ معنی پیدہ کرنچ سۅد بۅد تھاوان۔ پیٹھہ کنہِ دنہ آمتۍ ہوۍ کامیاب شعر چھہِ پزۍ پاٹھۍ کاشرِ شاعری ہنزِ خۅش آیندگی ہنز ضمانت پیش کران۔

پیٹھمہِ طرح کس "بہ” ردیفس مقابلہ اوس بییس طرحس منز "سٲری” ردیف وول رفیق رازُن اکھ مصرعہ دنہ آمت۔ اتھ طرحس پیٹھ موصول غزلو منزہ چھہِ کینہہ شعر پیش یم توجہ طلب چھہِ۔

ژانگۍ ہوۍ اسۍ راتھ کیت شولاں چھہِ سٲری
زیر لج پردس تہ بس لرزاں چھہ سٲری (رفیق راز)

شرۍ جماتھا چھم تہ گرہ چھم ونہِ تہِ وہرتھ
کُس اتر کوٚرمت یہ چھکھ مندچھاں چھہِ سٲری (شانتی ویر)

اکھ ہوا رنگ، آبہ جۅے، بلبل تہ جنگل
یتھ دلس گدرس میہ تنبلاواں چھہِ سٲری (خالد بشیر)

ٲس کمہِ پوشچ سۅ خۅشبو اسہِ ژۅاپارۍ
وۅنۍ ستن وارٮن اندر ژھاراں چھہِ سٲری (محمد رمضان)

گاش کوٚرمت چھکھ دفن غارن گۅپھن منز
انہِ گٹس منز قد پنن میناں چھہِ سٲری (ظفر مظفر)

یس وسے سونچاں بہ دمہا نالہ اتھ منز
یتھ سیکستانس توے زاگاں چھہِ سٲری (نثار عظم)

رفیق راز نہِ غزلک مطلع چھہ اکھ پراسرار صورت حال پیش کران چھہ، یتھ منز  نامعلوم خوف، پردہ، شولونۍ ژانگۍ اکھ داستان بیان چھہِ کران یتھ سانہِ نفسیاتی زندگی سیتۍ تعلق باسان چھہ۔ شانتی ویر سند شعر چھہ غزلہ کیو روایتی مضمونو نیبر نیرتھ اکس خاص سماجی، اقتصادی صورت حالس کن اشارہ کران۔ غزلکۍ ایمایی مضمرات چھہِ ییتیاہ قوی آسان زِ میہ چھہ شانتی ویر سند یہ شعر غالب سند مشہور شعر یاد پاوان” ہزاروں خواہشیں ایسی۔۔۔” خالد بشیر سند شعر چھہ اکھ عام مضمون اکس خوبصورت اندازس منز پیش کران۔ یہ شعر چھہ سٲنس مخصوص سیاسی صورت حالس کن تہِ اشارہ کران یتھ منز عام انسانہ سنز سادہ مزاجی ظاہر چھیہ۔ محمد رمضان سند شعر چھہ ہاوان زِ تمن چیزن ہندس راونس پیٹھ کتھہ پاٹھۍ  چھہ انسان پایس پیوان یم سہ  فار گرانٹڈ نوان چھہ۔ یہ شعر چھہ یقین تہ روحانی قدرن ہندس راونس کن اکھ بلیغ اشارہ۔ ظفر مظفر سند س شعر س منز چھہ گاش غارن منز دفن کرُن اکھ دلچسپ تضاد پیش کران۔ امہ شعرک علامتی پہلو چھہ ظاہر۔ یہ شعر گژھہِ پتمہ طرح کٮن گاش کس استعارس سیتۍ تعلق تھاون والٮن باقی شعرن سیتۍ پرُن۔ نثار عظم سند شعر تہِ چھہ سیٹھا دلچسپ ۔یتھ  بیہ وقعت سیکستانس کن کانہہ کانہہ مجبورا لگان اوس تتھ چھیہ تیژ تھپہ تھپھ زِ پریتھ کانہہ چھہ یہ دپۍ زِ تہِ زاگان۔ یہ شعر چھہ جبر تہ مجبوری ہندِ حبسہ دمک صورت حال پیش کران ۔

بیاکھ طرحک مصرعہ اوس عبدالاحد آزاد سند اکھ مصرعہ "آسمانن دامنس تل رٹ زمین”۔ اتھ پیٹھ وننہ آمتٮن غزلن ہندۍ زیادہ متاثر کرن والۍ کینہہ شعر چھہ درج:

اسۍ چھہِ کوتر لامکانکۍ وپھ تُلو
تل پتالس سیتۍ کرۍ تن أٹ زمین (رفیق راز)

سیتۍ اوسم شنیہس منز سرۍیہ ژونگ
ٲس شانن پیٹھ میہ تجمژ مٔٹ زمین (ایاز رسول نازکی)

آسمانچ شبنم افشانی بجا
وقتہ کٮن زخمن چھیہ مرہم پٔٹ زمین (محمد رمضان)

تالہِ پیٹھ دوٚدمت شہل ون یارِ ہند
تل پدٮن شیدا چھیہ اڈ دٔز ۂٹ زمین (علی شیدا)

اتھ طرحس منز اوس غیر مستعمل قافیہ  یمہ کنۍ شعر بناونۍ مشکل تہِ اوس تہ پرامکان تہِ۔ رفیق رازن شعر چھہ انسانہ سنزِ روحانی حقیقژ کن اکھ بلیغ اشارہ۔ انسان چاہے کنہِ تہِ سنگین دۅلابس پھسہِ، سہ ہیکہِ نہ تتھ منز زیادہ کالس قید روزتھ یوٚت تام تسند خمیر تہ ضمیر صاف آسہِ۔ تقریبا یژھے ہش کتھ وننہ خاطرہ یم پیکر تہ استعارہ ورتاونہ آمتۍ چھہِ تم چھہِ سیٹھا دلچسپ۔ کوتر چھہِ تمن جاناوارن منز   یم زمینہِ تھوٚد آسمانس منز پرواز کران چھہِ۔ تلپتال چھیہ سۅ جاے یمہ منزہ نیرُن مشکلے اوت نہ بلکہ ناممکن تہِ چھہ۔ وپھہِ منز چھہ موٚر ترٲوتھ ژلنک تہِ معنی موجود۔لامکان، تل پاتال، کوتر  لفظن ہند ورتاو ہ تہ زمین تہ تل پاتال سیتۍچھہ اتھ شعرس منز داستانوی رنگ پیدہ گوٚمت۔ ایاز رسول نازکی چھہ عجیب غریب صورت حالک اظہار کران۔ اتھ منز تہِ چھہ اکھ نیم داستانوی فضا قایم گژھان یتھ منز سرۍیہ ژٲنگس برابر مۅژان چھہ تہ زمین چھہ مچہ ہندۍ پاٹھۍ شانن لدتھ متکلم شنیاہ کس سفرس پیٹھ نیران۔ یتھٮن شعرن چھہِ نہ لفظی معنی قایم گژھان بلکہ چھہ اکھ مبہم تاثر وۅتلان یس معنوی امکاناتن کن اشارہ کٔرتھ ہیکہِ۔محمد رمضان سندس شعرس منز چھیہ قول نبنچ قابلیت موضوع مطلب تہ ارتکازہ کنۍ پیدہ گمژ۔ یہ چھہ غالب سند شعر "رگ لیلی کو خاک دشت مجنوں ریشگی بخشے” تہ اقبال سند شعر "آسماں تیری لحد پر شبنم افشانی کرے” دۅشوے یاد پاوان تہ یمن دۅشونی شعرن ہندۍ معنوی امکانات چھہِ اتھ منز داخل گژھان یم شعر کس مبہم صورت حالس روشن کران چھہِ۔ علی شیدا سندس شعرس منز چھہ تتھٮن مشکل حالاتن ہند اظہار  یم سانۍ حقیقت تہ  سون اعتبار دۅشوے اکی رنگہ اذیت ناک بناوان چھہِ۔ یہ ہشر چھہ ون یارِ  (اعتبار/یقین) تہ اڈ دز ۂٹ (حقیقت) سیتۍ قایم گژھان۔ ون یٲر نہ بلکہ چھہ ون یارِ ہند شہل دوٚدمت یس سانہِ اعتبارک آسن، نہ آسنس منز تبدیل کران چھہ۔

یمن مشاعرن منز یتھۍ یتھۍ شعر برونہہ کن یُن چھہ کاشرِ غزلیہ شاعری ہندٮن توقعاتن منز بے شک  ہرٮرکران۔

گزر ژورِ ہند استعارہ

GUZAR

شہل تہ شوژ چھہ کاشر غزل وناں عازم
ویو تہِ نے تہ گُذر ژورِ ما انتھ ہیکہِ مال

(نیب شمارہ اول اکتوبر 1968)

 

یہ چھہ مظفر عازم سند اکھ مشہور شعر، یمیک چرچہ میٲنس لۅکچارس منز واریاہس کالس رود۔ اتھ منز یۅس کتھ وننہ ٲس آمژ سۅ  ٲس یتھہ کنۍ تہِ دلچسپ خاص کر تتھ وقتس منز ییلہ کاشرِ شاعری منز نویرہ رنگۍ واریاہ کینہہ لیکھنہ اوس یوان تہ نوۍ نوۍ تجربہ کرنہ رنگۍ مختلف ماخذن فایدہ تلنہ اوس یوان۔ مگر امچ دلچسپی ٲس امہِ کس انداز بیانس منز تہِ ۔ یہ استعارہ اوس شاعری ہندِ خاطرہ نو٘و تہ اتھ دورس منز ٲسۍ شاعر پننہ پننہ مقدورہ تہ مزاجہ مطابق  نوۍ نوۍ استعارہ ورتاونچ کوشش کران۔

وچھو ہے تہ اتھ منز چھہِ زہ بیان۔ اکھ  یہ دعوی زِ عازم چھہ شہل تہ شوژ کاشر غزل ونان۔ یہ دعوی چھہ یہندِ غزلہ چہ زبانۍ تہ استعارن ہندس حدس تام واریاہ صحیح۔ یہ اوس تمہ وقتہ تہِ صحیح ییلہ یہ شعر وننہ اوس آمت تہ از تہِ چھہ۔ حرف ڈاے چھیہ امچ گواہی دوان۔ زبانۍ ہندِ رنگہ شوژ کاشر غزل ونن والین شاعرن منز ہیکون اسۍ عازم سرس تھٲوتھ۔ یہ چھہ ساروے کھوتہ شوژ کاشِر زبان ورتاوان۔ میہ باسان یس غزل زبانۍ ہندِ رنگہ شوژ آسہِ، سہ آسہ شہل تہِ۔

دو٘یم بیان چھہ گزر ژورِ ہند۔ مال انن چھہ نہ گناہ مگر یہ مال گژھہِ جایز طریقہ اننہ یُن۔ اگر الیٹ سند قول نظرِ تل تھاوون (حالانکہ الیٹن تہِ چھہ یہ قول بیۍ سے ژورِ نِتھ ورتومت) جایز طریقہ چھہ نقل کرنہ بجایہ ژورِ انن۔ مگر گزر ژورِ ہند استعارہ چھہ اسہِ ونان زِ مال تارنہ خاطرہ چھہ اتھ ٹیکسہ ہن دنۍ ضروری۔ یہ ٹیکس چھہ شاعر نقل کرنہ بجایہ اتھ پننہ زبانۍ تہ روایتس ہم آہنگ بناوان۔ یہ چھہ اتھ کاشراوان۔

مظفر عازم چھہ پننہ شاعری منز اتھ اصولس سختی سان پابند باسان۔ امہ علاوہ چھہِ یم شعرن منز کتھ اشارن منز وننک قایل۔ یمہ ساتہ یم شعرہ نیبر کانہہ کتھ نثرس منز تہِ ونن اشارنے منز ونن یمہ کنی یہ سمجن کنہ ساعتہ مشکل گژھان چھہ زِ تم چھا الف ونان کنہ بے۔

دو٘یمہ بیانک بیاکھ دلچسپ نکتہ چھہ شود تہ شوژ مال نہ ویُن۔ اتھ منز چھہ طنزتہِ تہ پیراڈاکس تہِ ۔ امہ کین معنوی پہلوون چھہِ اسۍ سٲری بخوبی واقف۔

 

 

مظفر عازم صابنی یم لفظ تھاووکھ ییتہ نس بطور یاداشت محفوظ:

گۅڈہ گۅڈہ یم میٲنۍ اردو شعر اذان رسالس منز یا اورہ یور چھپے، تم تۯاوتکھ الگٕے۔ گۆڈنیک کٲشر غزل چھپیو کۅنگہ پوش رسالس منز۔ دلیل بنییہ، جرنلسٹ مقبول حسین اوس مے یار۔ (شاید آسہ ہے 1954\1955) ۔ مقبول حسینن وۆن یہ دمو کۅنگہ پوش کس اڈیٹر، فراق صٲبس۔ بہ اوسس ازۍکی پٲٹھۍ تیلہ تہ مندچھہ بتھ ۔ مقبولن نیونس پانس ستۍ فراق صٲبن گرہ، غزل پۆرم تمس نشہ، تمۍ کۆر پسند تہ چھپیوو۔ یہ وۆنمے امہ کنۍ زہ سہ غزل چھم نہ کنہ اتھہ یوان، مگر اکھ شعر تمہ منزہ یتھ فراقن داد دژوو سہ اوس اتھۍ ژٲنگس زُتنۍ ہاوان: لٹِس اکھ گاشہ لٕے آسٕم پننۍ وتھ پانہ پۯزلٲوم یتُے وۆن زُتۍنہ وولن تارکن ہند بوش اسمانن (مے اوس لیوکھمت تارکن ہند تاو، فراق صٲبن دۆپ بوش لیکھوس، یُتے چھم یاد)۔