شہناز رشید نس اکس غزل پیٹھ فیس بک گفتگو


(29-27اکتوبر 2013)

ghazla

نذیر آزاد: شہناز رشید چھہ سانہ زمانک نمائندہ شاعر۔ اوہند اسلوب چھہ بیون تہ سر تازہ تہ سیتی چھیس عروضس پیٹھ تہ سنۍ نظر۔میہ چھہ باسان زِ  یتھ غزلہِ منز ییتہ شہنازنہِ فکرِ ہنز ندرت ٹاکارہ چھیہ تتی چھہ سہ عروضی لحاظہ کیاہ تام نوو چیز ہیتھ آمت یہ نہ ونہِ میہ سمجھ یوان چھہ۔ میانہ حسابہ چھیہ یہ غزل بحر متقاربس منز۔ مطلعہس منز چھہ ” تہ” متحرک یس وزنس منز ” تی” یا ” تے” بنان چھہ ۔ یتھہ کنۍ  چھہ امیک وزن بنان فعولن ژورِ پھرِ۔( متقارب سالم)۔ مگر پریتھ شعرک گوڈنیک مصرعہ چھہ بنان فعولن فعولن فعولن فعل یۅس امچ محذوف صورت چھیہ۔ میون طالب علمانہ سوال چھہ یہ غزل چھا سالم کنہ محذوف ؟ یہ چھا رائج تہ جائز؟

منیب الرحمن: یتھے بہ کُنہِ جایہ عروض تہ املا لفظ وچھان چھس بہ چھس تھود گژھان وتھتھ۔ خبر یہ کیا بیمارۍ؟  گوڈنچ کتھ چھیہ یہ زِ یہ چھہ بہترین غزل۔ ینہ یہ  پہلو عروضی کتھن تل دبتھ گژھہِ۔ متحرک ردیف ورتاونہ کنۍ  چھہ فعولن سالم رکن فعول بنیوومت۔ شعرن ہندین گوڈنکین گوڈنکین مصرعن منز چھہ اکھ جاے ترٲوتھ (فعو) ورتاونہ آمت۔ میانہ خیالہ گژھہِ نہ یمن جاین سالم رکن تہِ ورتاونس کھوژن۔ وزنس پییہ نہ کانہہ فرق اگر فعول چہ جایہ فعو ییہ یا فعولن۔ اندس پیٹھ چلن تریشوے۔ کاشرس منز چھہ متحرک ردیف ورتاونہ سیتۍ  امکان ہران۔ میہ آو یہ غزل امہ رنگہ تہِ پسند۔

نذیر آزاد: گویا کہ کاشرس منزچھہِ یتھۍ  عروضی تجربہ کرنچ نہ صرف گنجائش بلکہ ضرورت؟

منیب الرحمن: دۅشوے۔ گنجایش تہِ تہ ضرورت تہِ۔

رفیق راز: لفظ ٲخرس پیٹھ امہ آیہ استعمال کرنس منز چھہِ واریا امکانات۔ونہِ لگہِ اتھ عام گژھنس وقت۔ شہناز صابنۍ  یہ غزل چھیہ ونہِ دویم کوشش۔ گوڈنچ ٲس شاید یہ: (ہتھیار وارہ وارہ چھہ تراواں بہار تہِ۔۔۔۔ہردک اثر قبول کراں گل عذار تہِ)۔۔۔(مشکیں خیال میانۍ چھِ چینکۍ غزال ھوۍ۔۔۔از میانہ ڈیڈہ تل چھہِ گدا گر عطار تہِ) ( نیب تہ فیس بک)

منیب الرحمن: راز صاب اتھ کتھہِ کڈۍ  تو گینۍ۔ کتھ چیزس لگہِ عام گژھنس وقت؟ توہۍ چھوا متحرک ردیفچ کتھ کران کِنہ کُنہِ مخصوص عروضی نکتچ؟

رفیق راز: منیب صاب یم الفاظ (تہ، بہ ژہ، سہ بیتر) چھہِ بنیادی طور دو حرفی (یعنی عروضہ حسابہ سبب) مگر اسۍ  چھک یم لفظ اک حرفی مانان۔ یمے لفظ دو حرفی ماننس لگہِ وقت۔کامل صا بس پتہ کٔر میہ تہِ یم لفظ دو حرفی مٲنتھ کوشش۔ وونۍ چھیہ شہناز صابن تہِ  قابل تعریف کوشش کرمژ۔بہ چھس مانان زِ یتین یم لفظ اکہ حرفی چھہِ استعمال گژھان تتین چھہ اسۍ  بنیادی طور اکہ حرفچ تخفیف کران یس عروضی حسابہ جائز تہِ چھہ، نتہ چھہ یمن لفظن منز دویم حرف ہائے مختفی۔میہ چھہ باسان وضاحت گیہ۔

بہ اوسس پراران زِ کانہہ ہییہ ھے اتھ عروضی سام۔ پریتھ شعرک گوڈنیک مصرع چھہ (فعولن فعولن فعولن فعل/فعول) تہ پریتھ شعرک دویم مصرع (فعولن فعولن فعولن فعولن) تہِ کیازِ (تہِ) چھہ دو حرفی میانہ حسابہ۔

شہناز رشید: شکریہ ، سیٹھاہ شکریہ تمہ آیہ کتھ کرنہ خاطرہ،یمہ آیہ میانۍ خواہش ٲس ۔ نذیر آزاد صاب عروضی معملاتن ہندِ حوالہ کتھ تلنہ باپتھ، تہ منیب صاب تہ راز صاب کتھ برونہہ پکناونہ باپتھ، نکتن واش کڈنہ تہ عروضی زاوۍ جارن تہ تجربن ووکھنے کرنہ خاطرہ توہہ ترشونی صاحبن ہند سۅ دلہ شکریہ ۔ یمن چیزن ہنز چھیہ  سخ ضرورت تہ یہ ضرورت ہیکہ صرف یہے نیب پیج پورہ کٔرتھ،،بلکہ یہ اکھ تحریک بنٲوتھ۔

نذیر آزاد: کامل صاب چھہ ” مس ملر ” (1955ع) مجموعس منز لیکھان ” یمہ نظمہ وننہ وزِ چھہ میہ شعوری طورمختلف صورژن تہ بحرن اندر تجربہ کرنس سيتۍ سيتۍ ۔۔۔۔۔۔” ۔ اتھ مجموعس منز چھیہ کامل صابنۍ  یژھ اکھ غزل تہ نظم شامل یتھ ٲخری حرف متحرک چھہ۔ غزلہ ہند مطلع چھہ ۔۔۔۔چھیہ نہ زندگی یمۍ  آسہِ کھیومت زخم کاری نہ/چھہ نہ زندگی واقف سہ دل یتھ بے قراری نہ۔۔۔ امہ باوجود چھس بہ یہ زانن یژھان زِ (1)ٲخری متجرک حرف مانوا اسۍ ژھوٹ آواز کِنہ زیٹھ ؟ (2) اکس شعرس منز ہیکہ وا اکھ مصرعہ سالم تہ بیاکھ محذوف بحرِ منز ونتھ ؟

رفیق راز: آزاد صاب میہ کو٘ر گۅڈے عرض زِ ( یہ، تہ، نہ، تہ، بہ) بیتر چھیہ زیچھہ آوازہ۔ یمن منز چھہ ہائے مختفی گپتھ۔ وونۍ گو٘و  ییلہ اسۍ  یم لفظ شعرس منز باگ چھہِ  استعمال کران تمہ ساعتہ چھہِ اسۍ  یہ ہائے مختفی دباوان یعنی اسۍ  چھہِ یمن لفظن تخفیف کران تہ اسہِ چھہ باسان زِ یم چھیہ ژھوچہ آوازہ۔ یہ تخفیف چھیہ غیر شعوری طور سپدان۔مانی تو یم چھہِ  اردو ( نہ، یہ) لفظن ھندۍ  پاٹھۍ  زیچھہ آوازہ تہِ تہ ژھوچہ آوازہ تہِ۔ عروضی لحاظہ ہیکن یم آوازہ منزس استعمال سپدنہ وزِ  ژھوچہ آوازہ بٔنتھ مگر ٲخرس پیٹھ استعمال سپدنہ وزِ  روزن یم زیچھہ آوازے تکیازِ  ٲخرس پیٹھ چھہ نہ تخفیف یوان کرنہ۔

مظفر عازم: رتن پورے بہتھ دوبۍ داتھرس پیٹھ
محی دینس کرو کتھ تارہ یکھنا
میہ پیو٘و  از یاد سہ اوسا اسہ غزل کِنہ وژن بوزناوان یمن یتھے کنہِ اندس پیٹھ متحرک حرف اوس آسان، دُحرفی اوس شاید پرنہ یوان ژہ بہ وغیرہ۔ میہ دو٘پ کٲنسہ پلوامہ کس ما آسہِ یاد۔

نذیر آزاد: راز صاب۔ میون موقف تہ چھہ یی زِ  ٲخرس پیٹھ آمژ متحرک آواز چھیہ سانہ آہنگہ مطابق زیٹھان تہ ٲخر چھہ ساکن گژھان۔ امہ لحاظہ چھہ نہ کامل صاب ،تہنز، شہناز صاب ( یژھہ کوششہ چھیہ بییہ تہِ کینژو دوستو کرِمژہ ) نین غزلن منز ٲخری حرف متحرک روزان۔میانہ خیالہ چھہ یہ فارسی/ اردوہکۍ پاٹھۍ سانہ زبانہِ ہندس مزاجس عین مطابق ۔ امہ منطقہ موجب چھہ شہناز صابن مطلع تہ باقی شعرن ہندۍ دویم مصرعہ سالم بحرِ منز۔ ییلہ زن یمن شعرن ہندين گوڈنکين مصرعن منز چھہ ٲ خری رکن ” فعو” یوسہ امچ محذوف صورت چھیہ۔ یہ صورت حال چھا روا؟

منیب الرحمن: یہ چھہ اکھ دلچسپ، تہ زیوٹھ بحث۔ عازم صاب چھہ صحیح فرماوان (عازم صابن کمینٹ یتھ کن یہ حوالہ چھہ، چھہ ڈلیٹ گومت۔ شاید تمو پانہ کورمت)۔ اندس پیٹھ متحرک لفظ چھہ لل دید، شیخ العالم تہ تمن پتہ تہ واریاہو شاعرو ورتوومت۔ مگر تم  ٲسۍ نہ فارسی عروض ورتاوان لہذا اوس نہ تمن کانہہ مسلہ، خاص کر واکھن منز۔ وژنن منز اگرچہ متحرک لفظ اندس پیٹھ ورتاونہ آمتۍ  چھہِ، اکثر جاین چھہِ لیہ ہندس زیچھرس سیتۍ  زیٹھراونہ آمتۍ ۔ "بہ” چھہ بنان "بو”۔ عربی عروضس منز چھہ متحرک لفظ ٲخرس پیٹھ ورتاونہ یوان تکیازِ تم چھہِ عروضس منز تنوعکۍ قایل۔ فارسی تہ اردوس منز چھہِ زیادہ سخت اصول۔ مثلا یہ زِ  اندس پیٹھ ییہ نہ متحرک لفظ (یتھ کن راز صابن پیٹھہ کنہِ اشارہ کو٘ر)۔ کینژھا چھہ امیک وجہ یمن زبانن ہندۍ لفظ۔ کاشرس منز چھہ ٲخرس پیٹھ متحرک لفظ ینک زیادہ امکان۔ اتھۍ  کن وچھتھ اوس کامل صابن یہ تجربہ کو٘رمت۔ راز صاب چھہِ ونان ز ِ”ٲخرس پیٹھ چھہ نہ تخفیف یوان کرنہ۔” یہ چھہ عروضی اصول یس کاشریو نہ بلکہ فارسی والیو بنوومت چھہ، عربی یس منز چھہ اتھۍ  عروضس منز ٲخرس پیٹھ تخفیف یوان کرنہ۔ کاشرۍ  لفظ "بہ” ، "تہ”، ژہ” چھہِ نہ زیچھہ آوازہ، املا ہس کُن مہ گژھو۔ حروف ملفوظی تہ مکتوبی بحث آسہِ توہہ یادے۔

فارسی تہ اردوس منز چھہ نہ "کہ” کاشرۍ  پاٹھۍ  "کِ” بولنہ یوان بلکہ "کے” یعنی تمن نش چھیہ یہ زیٹھ آواز، اسہِ نش نہ۔ اسہِ نش گیہ یہ ژھوٹ آواز۔

مظفر عازم: روایتک احترام کُرن چھہ پریتھ معزز شہری سند فرض۔ روایتس تلک پیٹھ کُرن چھہ پریتھ صاحب ایجاد سند فرض۔ پگاہ کیا چلہِ تہ کیا نہ، تہِ کُس آو وچھتھ ۔ چھِٹھ چھیہ لاگنۍ پننہ مزازہ۔
غزلہ ہن چھے نفیس، شوقہ سدرس چھہ وسن۔
اگر ریوایت نواز خوش کرنۍ  چھہِ، تیلہ گو٘و  گۅڈنیک مصرع "تہ” ورٲے لیکھن۔ تکیازِ وۅستو دو٘پ مطلع چھہ غزلہ کہ عروضک رۅخ مقرر کران۔ ﴿یہ تہ وۅستو زِ غزل ہیکہ مطلع ورٲے تہِ ٲستھ ۔﴾ شاعری تراو تہ، میہ چھہ نہ عام زندگی منز تہِ روسومن ہنز غلامی پسند، مگر کھیلس سیتۍ تہِ چھہ پکن، سوال چھہ صرف کمہِ وقتہ کیا چلہِ۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s