مشروع نصیب آبادی سنزہ نظمہ


mashru

میہ چھیہ خوشی بہ چھس مشروع نصیب آبادی سنزہ تریہ نظمہ بلاگ کین پرن والین بطور اکھ تحفہ پیش کران۔ مشروع چھہ تصوف کنۍ زاننہ یوان تہ اکثر پابند شاعری کران۔ نظمہِ کن توجہ چھیہ اکھ خۅشگوار تبدیلی۔ یمن نظمن ہندِ تعلقہ چھیہ کینہہ کتھہ ضروری یم میانہِ خاطرہ، شاعر سندِ خاطرہ تہ پرن والین ہندِ خاطرہ شاید وتھ گاشراون۔

وننہ چھہ یوان زِ شاعری چھیہ خوبصورت زبانۍ ہند ورتاو۔ یہ ہن چھہ پو٘ز۔ امہ خوبصورتی ہند گۅڈنیک قدم یا ونیوس شرط چھہ یہ زِ زبانۍ منز گژھہِ صفایی آسنۍ۔ مثلا اگر کنہِ کمرس اندر خوبصورتی ہند کوتاہ تہِ سامانہ آسہِ مگر صفایی آسیس نہ، سۅ خوبصورتی چھیہ راوان۔ زبانۍ ہنز صفایی چھیہ خیالس تہ زبانۍ ہندِ مطابقتک ناو تہ امہ مطابقت سیتۍ یُس زبانۍ منز ارتکاز یوان چھہ، تمیک ناو۔ مشروع سنزن نظمن منز چھیہ یہ صفایی درینٹھۍ یوان۔

مگر صفایی یوت کرِ نہ کینہہ۔ زبانۍ ہند خوبصورت ورتاو تہِ گژھہِ آسن۔ سہ گو٘و یہ اگر کمرس منز سیٹھا صفایی آسہِ مگر خوبصورتی ہند آسیس نہ کانہہ سامان منز، ‎سۅ صفایی ہیکہِ نہ دلس تہ دماغس آورٲوتھ۔ خوبصورتی ہند سامان چھہِ پیکر ۔ پیکرن ہندۍ چھہِ قسم۔ زیادہ عام پیکر چھہ تم یم اچھن یعنی وچھنس سیتۍ تعلق تھاوان چھہِ۔ جدید دورس منز آو اتھ پیکرس پیٹھ زیادہ زور دنہ۔ وجہ یہ زِ جدید تصور مطابق چھہ شاعر وننہ بجایہ ہاوان۔ تم پیکر یمن آوازِ سیتۍ، یا مزہ یا مشکس یا لمس کین حیسن سیتۍ تعلق آسہِ، تم ورتاونۍ چھہ نہ آسان۔ پیکرن ہند اکھ قسم چھہ ذہنی یا تصوری پیکر۔ مشروع سنزن نظمن منز چھہِ یم پیکر تہِ درینٹھۍ یوان۔ یوت یوت یم پیکر نوِرہ سان ورتاونہ ین، تیوت تیوت ہرِ یمن ہند مۅل۔

صفایی تہ خوبصورتی پتہ چھہ لازما انسان سند "ذہن” فکرِ ہند عنصر ژھاران یعنی کنہِ تہِ خوبصورت منظرس منز سرینیر ونہِ کڈنچ کوشش کران۔ اتھۍ فکرِ تہ سرینیرس چھہِ اسۍ معنی یکۍ تہہ یعنی سطحہ ونان۔ یہ فکر چھیہ تتھیو ولو سیتۍ پیدہ گژھان یمن منز کنایہ (یعنی حوالہ یا اشارہ یا رمز) تہ استعارہ تہ علامت تہ یتھی باقی چیز یوان چھہِ۔ یمو ولو سیتۍ چھہ شعر وضاحت کہ عیبہ نش بچان۔ زبانۍ ہندس یتھس ورتاون کن تہِ چھہ مشروع سند توجہ ہیو٘تمت گژھن۔

یمن چیزن ہند آسن چھہ سیٹھا مگر اکھ کامیاب تہ روزن وول شاعر چھہ پننس اکس شعرس یا نظمہِ منز (یتھے پاٹھۍ افسانس منز) یا پننہِ کلہم شاعری منز اکھ تخیلاتی دنیا آباد کران۔ پرن وول تہِ چھہ پران پران اتھ دنیاہس منز قدم تراوان تہ امیک سیر کٔرتھ یوان۔ پرن والۍ سند یہ تجربہ چھہ ادبک حاصل۔ شاعرس چھیہ او٘ت تام تہِ واتنچ کوشش کرنۍ۔

یمو کتھ الگ، مشروع چھہ دینی یا تصوف کین موضوعن سیتۍ دلچسپی تھاوان۔ مگر اگر نہ یتھین موضوعن باریک فکری پہلو نیرن تہ اگر یم معلوماتن تہ ویدین اظہارن تامے محدود روزن، تتھ ہیکو نہ شاعری ؤنتھ۔ میہ چھیہ خوشی تصوف چہ دلچسپی کنۍ چھہ مشروع یمن فکری پہلون کن اچھ تلنچ کوشش کران۔ خالص تصوف چھہ نہ سانہِ زمانک غذا۔ کاشر صوفی شاعری چھیہ سۅے اسہِ ونہِ متاثر کران یتھ منز پیٹھمین ژۅن کتھن ہند عمل دخل چھہ۔

ذاتی طور چھس بہ سمجان زِ شاعر یا کانہہ تہِ ادیب چھہ پننہِ فن کہ ذریعہ انسانی وجودس، انسانی رشتن تہ کایناتس منز تنوع تہ تتھ تنوعس منز وحدت ژھاران، لہذا ہیکہِ نہ اکھ ادیب اعتقادی، علاقایی تنگ نظری منز بند گژھتھ۔ اور کُن چھہ خیال تھاوُن ضروری۔

نظم اکھ

بصد تعشوق
آں خلاق
سیاہ سٔدرس چھہ لایاں تھاہ
اناں کھالِتھ مُخیُّل شُد
دُر مکنون
سریرِ غیبہ پیواں پھی٘رۍ  پھ٘یرۍ
سرِ قرطاسِ آفاقس
کزلۍ جامن اندر ظاہر گژھان
کم کم سرخ انہار
نِواں مہۍ مہۍ متین وچھتو
یہ کمہِ ہاوسہ تہ کمہِ امارہ
یہ غیبک غیب گژھاں اظہار

 

نطم زہ

نیندر رٲو
تسند تعشوق چھا
ہاوس پنن وبالۍ  کران؟
کنِہ خوف؟  وسوسہ؟
یہ زندگی، معنہ کیاہ چھس ؟
تہ موت بیاکھ عالم؟
یتیک ویو٘د ماحول
تتیک بیہ پے  بے
وہۍ،  اتھۍ دۅلابس منز
شیہج، مژ تہ مژھج
نیندر رٲو

 

نظم تریہ

زِ قدم  آو آدم
سیتۍ ہیتھ غم
ژھنتھ نالۍ زنمہ ہانکل
قرنہ وادو پیٹھہ
سجاوان جہان کاف و نون
بصورت شوق بہ باطن غم
دوان تھکہ رو٘س دوان ماتم
لبان زاین مران کر کر
یو٘ہے شر ہیتھ تا محشر

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s