عروضی تقلید تہ اجتہاد


image

 

کلامِ مشؔتاق کشمیری

بستی چھُہ کلۍ گنِرا مگر بے سایہ ونے کیا
اڈہ بزۍ کٔرتھ ژُھن سونتھ گریشمنہِ کرایہ ونے کیا

پریتھ پاسہ گٹہ زۆل وۆتھ تہ تُلن واو پھِرُن ڈوٹھ
چھُس گاش ہیتھ اتھۍ منز پکان بے وایہ ونے کیا

تس سیتی چھیم نسبت بہ توے چھس سیٹھا بے باک
عرشک تہ بییہ فرشک چھہ یُس سرمایہ ونے کیا

پاتھل تہ نب دۅشوے چھہِ خلیلس کران آلو
نمرود یمہ وقتکۍ چھہِ نوِ نوِ ترایہ ونے کیا

مۅکھ فطرتک تابندہ درخشان سیٹھا جان
تَمہ نوو تھَن ژُھنتھن ژیہ کٔرتھ ہایہ ونے کیا

یتھ کایناتس ٲس چانی براندہ کنۍ استان
چھیۍ کھوژناوان از ژھرے گگرایہ ونے کیا

کُن کفرکێن کریہنێن اتھن منز مفتیو اسلام
دِلِہ منز چییکھ اتھ سوداہس پیٹھ چایہ ونے کیا

یمہِ دینہ خاطرہ کرۍ صحابو ٹاٹھۍ زو قربان
کُن وعظ خوانو سرۆگ تہ ہیژ ہس لایہ ونے کیا

مشؔتاق میہ وچھمکھ ژہ دۅہے سوزِ جگر ہیتھ
ناحق کران بدنام چھی پریتھ شایہ ونے کیا

 

تقلید

ہزج بحرک اکھ وزن چھہ مفعول مفاعیل مفاعیل فعولن۔

اتھ وزنس چھہ ونان مثمن یعنی 8۔ اتھ وزنس منز چھہِ پورہ شعرس منز 8 رکن آسان۔ فی مصرعہ 4۔ یم 4 رکن چھہِ یم: مفعول (1) مفاعیل (2) مفاعیل (3) فعولن (4)

یم ژۅشوے رکن چھہ امہ بحرہ کہ سالم رکن (مفاعیلن) منزہ مختلف زحافو کنۍ درامتۍ۔

مثمن زیچھرک (یعنی پورہ شعرس منز 8 رکن، اکس مصرعس منز 4) سالم وزن چھہ:

مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن

اتھ مفاعیلن رکنس چھہِ یم زحافہ بنان:

مفعول چھہ خرب زحافہ لاگو کٔرتھ بنان:  مفاعیلن > مفعول

مفاعیل چھہ کف زحافہ لاگو کٔرتھ بنان:  مفاعیلن > مفاعیل

فعولن چھہ حذف زحافہ لاگو کٔرتھ بنان: مفاعیلن > فعولن

(کتھہ چھہِ یم زحافہ بنان تمہ خاطرہ پٔرو کانہہ عروضی کتاب۔)

اصول چھہ گۅڈنیک رکن ہیکہِ صرف مفعول بٔنتھ (مفاعیلن > مفعول)، دویم تہ تریم رکن ہیکن صرف مفاعیل (مفاعیلن > مفاعیل) بٔنتھ، تہ ٲخری رکن ہیکہِ فعولن بٔنتھ (مفاعیلن > فعولن)۔ آخری رکنس پیٹھ چھیہ کینہہ آزادی دنہ آمژہ۔ تتھ پیٹھ چھیہ نہ ییتہ نس کتھ ضروری۔

یۆہے اصول چھہ اتھ وزنس مفعول مفاعیل مفاعیل فعولن منز کارگر۔

اتھ وزنس چھہ پورہ ناو ہزج مثمن اخرب مکفوف محذوف

یعنی وزن چھہ ہزجک، رکن چھس 8 (پورہ شعرس منز)، مصرعک گۅڈنیک رکن چھہ خرب زحافہ (اخرب)، دۆیم تہ تریم رکن چھہِ کف زحافہ (مکفوف) تہ ژورم چھہ حذف زحافہ (محذوف) بنیومت۔

کتابی عروض والین چھہ یُتے پتاہ تکیازِ کتابن منز چھہ یتے لیکھتھ۔
___

 

اجتہاد

ہزج مثمن اخرب مکفوف محذوف

پکیو وۅنۍ وچھو اتھ ناوس سیتۍ کیا تعلق چھہ اتھ غزلس۔

ہزج مثمن ۔ فرض کرو زِ یہ وزن چھہ ہزج بحرک تہ وزن چھس مثمن (8 رکن)۔ یہ ثابت کرنہ خاطرہ کرو اسۍ اتھ غزلس تقطیع۔

اخرب مکفوف محذوف ۔ یہ چھہ امہ بحرک اکھ عام مثمن وزن۔ آہنگ تلہ چھہ باسان زِ اتھ غزلس منز چھہ یۆہے وزن ورتاونہ آمت۔ چلو تقطیع کرو، وچھو سون تُک چھا صحیح۔

تمام مصرعن منز چھہِ گۅڈنکہ رکنہ چہ جایہ ساری لفظ اتھ وزنس پیٹھ کنہِ سقمہ ورٲے برابر یوان۔ مبارک، اکھ قدم کۆر اسہِ طے۔

گۅڈنیک رکن چھہ ہندسن ہنزِ زبانۍ منز 2+2+1 (یعنی 2 آوازہ، 2 آوازہ، 1 آواز)

مثلا:
"بستی چھہ” لفظن ہنز تقطیع: بس (2)+ تی (2)+ چ (1) ۔۔ (مفعول)
"چھہ” کیازِ لیۆکھ میہ صرف چ؟  ژھۅچہ آوازہ (مثلا ییتہِ نس پیش) یمن اعراب ونان چھہِ تہ ھ چھہِ نہ آوازن ہندس حساب کتابس منز مجرا یوان۔

گۅڈنیک رکن آو اسہِ مفعول (اخرب) برابر۔ دۆیم تہ تریم رکن گژھہِ مفاعیل یُن۔ یعنی ہندسن ہندِ مطابق 1+2+2+1

تمام غزلس منز چھہ دۆیمہِ رکنہ چہ جایہ صرف اکس مصرعس منز مفاعیل یوان۔

مشتاق میہ وچھمکھ ژہ

مشتاق 2+2+1 (مفعول) میہ وچھکمھ ژہ 1+2+2+1 (مفاعیل)

تریمہِ رکنہ چہ جایہ چھہ 18 ہو مصرعو منزہ صرف 6 مصرعن منز مفاعیل یوان۔ (تقطیع کرو پانے)

باقی تمام مصرعن منز چھہ دویمہ تہ تریمہ رکنہ چہ جایہ  1+2+2+1 بدلہ 2+2+2+1 یوان۔ لہذا ہیکو اسۍ ؤنتھ زِ یہ غزل چھہ یمن جاین ہزج مثمن اخرب مکفوف محذوف مطابق پھٹان۔ ممکن چھہ یہ ما آسہِ بییہ کنہِ بحرہ کس کنہِ وزنس منز (مثلا مستفعلن مستفعلن بیترِ)۔ بییہ کُنہِ بحرہ کس کُنہِ وزنس کن گژھنہ برنوہہ کرو بییس کتھہِ پیٹھ غور۔ ییلہ اسۍ یہ غزل پران چھہِ تقطیع کرنہ کہ ارادہ ورٲے اسہِ چھہ اتھ منز آہنگ ٹھیک ٹھیک باسان۔ کیا وجہ چھہ؟

دۆیمہ تہ تریمہ رکنہ چہ جایہ یُس اسہ ہندسو مطابق اکثر جاین  2+2+2+1 یوان چھہ، سہ کیا چھہ؟ عروضی ارکانو مطابق کتھہ پاٹھۍ ہیکون اسۍ یہ ہندسہ ترتیب لیکھتھ؟ واریاہ طریقہ چھہ۔ یہ ہیکہِ مفعولات ٲستھ۔ مگر مفعولات چھہ نہ ہزج بحرک کانہہ زحافہ مگر تمام عروضی کتابہ چھیہ ہزج بحرہ کس سالم رکنس 2 درجن پیٹھۍ زحافہ دوان یمن منز اکھ مرکب زحاف مفعولان چھہ۔ یہ مفعولان تہِ چھہ  2+2+2+1 ہندسن برابر۔ گۆو اتھ غزلس منز چھہ دۆیمہ تہ تریمہ رکنہ چہ جایہ 7 جاین مفاعیل مزاحف رکن یوان تہ 29 جاین مفعولان مزاحف رکن یوان۔

اگر ساری عروضی مفاعیلن رکنک اکھ مرکب زحافہ مفعولان دوان چھہِ، امیک ورتاو کونہ چھہ امہ بجرہ کس کنہِ وزنس منز؟ یہ چھا صرف امکان کِنہ اتھ پتہ کنہِ چھیہ عربی زبانۍ ہند کانہہ آہنگ اوسمت۔ تہِ ہیکو نہ اسۍ ؤنتھ، التبہ اگر یہ گنجایش موجود چھیہ، یہ زحافہ کیازِ ییہ نہ کاشرس منز اتھ جایہ جایز ماننہ ییلہ زن یہ سٲنس کاشرس آہنگس زیادہ موافق باسان چھہ؟

مفاعیلن چھہ 7 حرفی رکن ماننہ یوان تہ مفعولان تہ چھہ 7 حرفی رکن۔

مفعولان زحافہ چھہ دۅیو زحافو سیتۍ یکوٹہ بدس یوان، امہ کنۍ چھہ مرکب زحاف۔ خرم تہ تسبیغ ۔

وۅنۍ پکو اسۍ ژورمس رکنس کن۔

12 جاین چھہ اتہِ نس عام پاٹھۍ مستعمل مزاحف رکن فعولن یوان۔ 4 جاین چھہ مزاحف رکن مفاعیل یوان یمچ آزادی چھیہ۔ 2 جاین چھہ مرکب مزاحف رکن مفعولان یوان یمچ ٲخری رکن آسنہ کنۍ آزادی گژھہِ آسنۍ۔

میانہِ یمہ تجزیہ کنۍ ہیکون اسۍ یہ وزن یتھہ پاٹھۍ ظاہر کٔرتھ:

ہزج مثمن اخرب مکفوف/اخرم مسبغ محذوف

یمہ تجزیہ پتہ چھیہ نہ میہ کانہہ ضرورت یہ وزن باقی بحرن منز ژھانڈنک، حالانکہ کینہہ وزن چھہ مختلف بحرن منز آہنگہ لحاظہ ہوی۔

یمہ تجزیہ مطابق گوو یہ ثابت زِ یہ غزل چھہ وزنس منز تہ کنہِ جایہ چھہ نہ پھٹان۔ شاعرن چھیہ شاید کوشش کرمژ مفعول مفاعیل مفاعیل مفاعیل فعولن وزنس پیٹھ غزل وننک مگر کاشرۍ آہنگن چھیہ پانے بدل وتھ کڈمژ یمچ گنجایش ہزج بحرس منز گۅڈے موجود چھیہ، بشرطیکہ عروضی کتابہ طاقچس پیٹھ تھٲوتھ ییہ کتھ کرنہ۔

ٲخرس پیٹھ مشتاق کشیمری سنزِ شاعری پیٹھ۔ میون اکھ دوست وۆتھ "کشیرِ چھہِ زے شاعر پیدہ کرۍ متۍ۔ اکھ مشتاق کشیمری” اگر نہ تمی امہ پتہ امین کامل سند ناو ہیۆتمت آسہِ ہے، بہ ما تراوہس اسُن۔ میہ رۆٹ اسُن اندرے، سوچم میانہِ خاطرہ چھہ میونے مول بۆڈ۔ یوت تام میٲنس مالۍ سند ناو ہیێکھ، میہ نہ کانہہ اعتراض!!!

اکھ مصرعہ بوزو
طالب نہ کانہہ، جالب علم گۆو ضایع ونے کیا

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s