ازچ فیس بک کتھ باتھ — رسول میرنۍ زہ شعر


32(میہ دۆپ کٲنسہِ ما یِن یم کمینٹ بکار، ییتین تھاوو محفوظ کٔرتھ۔

فارسی شعر

(بشیر بڈگامی صابس کُن):  توہہِ کیازِ اتھ پیٹھ شک زِ رسول میر اوس نہ فارسی پاٹھی شعر ونان۔ بوزِو

کشیدی قوس ابرو، تیر مژگان بهر قتلم
نشستی در کمین اے ترک کماندار امشب

یہ چھہ بہترین شعر۔ نذیر آزادس آے تمۍ پھیر سون ظن رسول میر سندس لفظن ہندس انتخابس کُن یتھ شاذے کانہہ توجہ اوس دوان، راہی صابن چھہ رسول میرنین یمن شعرن "ہچوۍ گُڈنہِ تھیکناوُن” وۆنمت، باقین ہنز کتھ تھاوۍ تو الگے۔ تُرک کماندار گۆو اے کماندار معشوقہ، (خبر لوکھ ما سوچن یہ تُرک (ترکی) کیا اتہِ نس کران)۔ کانہہ ما ونہِ امشب چھہ صرف ردیف چہ مجبوری کنۍ۔ کمین تہ امشب چھہِ (ابرو تہ مژگان کِس کریہنیارس سیتۍ تہِ) اکھ اکۍ سند معنی مکمل کران۔ یہ بوزتو شب خون۔ امشب چھہ اتھ اکھ واقعاتی تجربہ بناوان، بییہ یتھ کتھہِ کُن تہِ اشارہ زِ ازۍ کہ شبہ اوس کیاہ تام سپیشل سپدن وول (شاید وعدک شب) مگر وچھ امی شبہ کۆرتھ میون قتل۔ ژکہِ چھُے ژیہ میون قتل مراد، مگر وچھ کیُتھ کمینہ چھکھ یم ابرو تہ مژگان بنٲوتھ میہ پھساونہ خاطرہ۔ یہ دپی زِ تہِ پتۍ کنۍ چھکھ حملہ کران (کمین اوس اکھ قوم یُس ژورِ پاٹھۍ حملہ اوس کران، ایمبش) یہ شعر چھہ اکھ بوڈ تہ سرون مضمون ہیتھ۔ بڈۍ بڈۍ شاعر چھہِ یاد پیوان۔

رسول میرنین شعرن منز چھہِ واریاہ فارسی لفظ یم تمن ہندین قدیم معنی ین منز ورتاونہ آمتۍ چھہِ، تُرک تہِ چھہ یموے لفظو منزہ اکھ یُس مجازس منز معشوق سندِ خاطرہ ورتاونہ اوس یوان۔ یہ چھہ ہاوان امۍ سند فارسی شعرک مطالعہ چھہ وسیع تہ وقیع اوسمت۔

________

ریختہ

جب آیا تو نے گھبرایا ہمارا من الا جانو
دیا دل تو پرائی نال رلائی تن الا جانو

نذیر آزادن چھیہ یمن شعرن پیٹھ کتھ کرمژ، مگر تمۍ چھیہ اتھ سلسلس منز اکھ غلطی کرمژ۔ تمۍ چھیہ یمن شعرن منز اردو زبانۍ ہنز آمد وچھمژ۔ دراصل اوس یہ اکھ فیشن یمیک ابتدا امیر خسرون کۆر۔ رفیق رازن چھہ کتہِ تام اتھ یمن شاعرن ہنز غیر سنجیدگی وۆنمت، حالانکہ تژھ کتھ چھیہ نہ، امیر خسرو اوس نہ غیر سنجیدہ شاعر، نہ اوس محمود گامی تہ نہ رسول میر۔ رسول میرن یم شعر چھہِ دراصل پنجابۍ (پنجابۍ اردو تہِ ہیکیوس ؤنتھ) یتھ یم واقف ٲسۍ۔ بشیر بڈگامی صاب، یُس شعر توہہِ نقل کۆروہ، تتھ پیٹھ چھیہ نذیر آزادن کتھ کرمژ۔ آزاد چھہ دۅیو لفظو پریشان کۆرمت۔ "نے” تہ "رلایی”۔ نوٹس منز چھُن لیۆکھمت زِ "نے” گژھہِ نہ آسن بلکہ گژھہِ آسن "نہ” یعنی جب تو نہ آیا۔ صحیح معنی یس چھہ ووتمت۔ رلایی لفظس متعلق چھُن وۆنمت زِ رسول میرن چھہ رلاون لفظ اردو گرامرہ حسابہ گۆنڈمت۔ انۍ نس برابری۔ حقیقت چھیہ یہ زِ یم دۅشوے لفظ چھہِ پنجابۍ لفظ۔ اگر ونہِ تہِ کانہہ لاہور گژھہِ سہ بوزِ یم لفظ یتھے پاٹھۍ۔ نہیں چھہ پنجابۍ تلفظ مطابق "نے” بولان، نستہ کنۍ۔ واریاہن اردو شاعرن مثلا جون ایلیا سندس کلامس منز تہِ وچھو تۆہۍ امیک ورتاو "نئیں”۔ پرٲنس اردوس منز تہِ اوس اتھ یۆہے تلفظ۔ ارود اوس نہ کشیر منز ورتاوس لہذا آسہِ مسودہ لیکھن والیو اتھ فارسی مطابق "نے” لیۆکھمت۔ یہ گژھہِ نہ اردوک "نے” بلکہ پنجابی "نے” پرُن۔ یتھے پاٹھی چھہ "رلائی” ਰਲਾਈਂ پنجابۍ لفظ یمیک مطلب مِکس کرُن چھہ یعنی ملایی۔ رسول میر سندۍ یم اکثر شعر چھہِ پنجابۍ تہ کاشر، نہ کہ اردو تہ کاشر۔ اردوک لول گۆو پوزے نذیر آزاد مگر تمہِ سیتۍ ما انو اسۍ اصلس ٹوٹ!!

پس نوشت: یہ "نے” ہیکہِ اردو، پنجابۍ بدلہ کاشر "نے” تہِ ٲستھ۔

"الا جانو” فقرس پیٹھ تہِ چھیہ نذیر آزادن کتھ کرمژ مگر اتہ تہِ چھین غلطی رژھا کرمژ۔ یہ چھہ نہ امۍ سے خطا بلکہ سارنے میہ سان، سٲری چھہِ اتھ یی پران۔ مگر اکہ منٹہ خاطرہ مانی تو کشیر منز چھہ نہ اردو آمت، صرف چھہ کاشر تہ فارسی "جانو” لیکھمتس لفظس کیا پرو؟ jano کِنہJanu (janooo) یہ لفظ تہِ چھہ دراصل پنجابۍ لفظ جانوٗ**یعنی میری جان، ٹاٹھنیار، میانہ زوا، جانانا۔ میانہ خیالہ چھہ نہ یہ کاشر "میانہِ جانو”، یہ چھہ نہ لفظ جانو بلکہ لفظ جانوٗ۔ کاشری پاٹھی ونو نہ جانو بلکہ ونو جانانو، جانو چھہ زیادہ تر پننس پانس کُن ونان۔ بہرحال، اتھ پیٹھ ہیکہِ اختلاف ٲستھ۔ میہ چھہ پورہ یقین یہ چھہ پنجابۍ جانوٗ۔ **ਜਾਣੂ

نذیر آزادن چھہ یہ شعر میہ باسان شاید غلط سمجھمت یتھہ پاٹھی سٲری اتھ غلط پاٹھۍ پران چھہِ، بہ تہ اوسس۔ نذیر آزاد چھہ لیکھان "یعنی اگر ووپرینہ دل دیتتھ، سو رلایی تنہ سیتی تن۔ یہ چھہ اندیشہ تہ تہ ممانعت تہ۔” میہ باسان رسول میر چھہ نہ ونان امس زِ ووپرس دیتتھ دل، اگر تژھ کتھ آسہے تیلہ کیا شکایت ٲس۔ سہ چھہ شاید ونان ژیہ دیتتھ میہ دل یا میہ دیت ژیہ دل، مگر تن درایکھ ووپرس سیتی رلاونہ۔ دیا دل، تو پراے ساتھ رلایی تن الا جانو

پتھ رود "الا” اتھ پیٹھ چھہ نذیر آزادن جان بحث کۆرمت تہ جان نتیجہ برونہہ کُن انۍ متۍ۔ اتھ متعلق چھہ میہ یُتے ونن زِ یہ چھہ فارسی لفظ "الا” یتھ پرٲنس فارسی یس منز "ھلا” تہِ ونان تہ لیکھان ٲسۍ۔ تتی پیٹھہ چھہ کاشر "ہلا” آمت۔ اسۍ چھہِ ونان ہلا، ہلا گژھ، بیترِ۔ الا تہِ چھہ اسۍ ونان۔

یہ چھہ پزۍ پاٹھۍ نداییہ (تنیہہ تہِ) بقول نذیر آزاد۔ فارسی یس منز چھہ یہ خالص الا ورتاونہ آمت، الا ای تہِ، الا یا تہِ، الا تا تہِ، الا گر تہِ۔

الا ای ترک آتش روی ساقی
به آب باده عقل از من فروشوی
سعدی

یمو تمام کتھو علاوہ چھیہ یہ کتھ زِ اتھ شعرس منز چھہ میہ باسان مسودہ لیکھن والین گڑبڑ گۆمت۔ چونکہ اتھ منز چھیہ مختلف زبانہ ورتاونہ آمژہ، اتھ ما آسہِ لوکن یاد تھاونس، لیکھنس منز گڑبڑ گۆمت۔ اڈۍ چھہِ اتھ شعرس منز ساتھ بدلہ نال لیکھان تہ ونان، یُس میانہِ خیالہ زیادہ قرین قیاس چھہ۔ بشیر بڈگامی صاب، توہہ چھہ پرائے بدلہ پرائی لیوکھمت۔  ٹینگ سندس کلیاتس منز چھہ ہمارا بدلہ ہمارے دِتھ۔ یہ غزل چھہ وژنہ چہ چالہِ وننہ آمت۔ تمہِ حسابہ چھہ نہ مطلع صحیح بیہان۔ کیہہ تام گڑ بڑ چھس گۆمت۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s