ہم کو شاعر نہ کہو

cropped-muneebpic1.jpg
ہم کو شاعر نہ کہو
منیب الرحمن



سطحِ دریا پہ تہہ آب کو پینے کی ہوس
بلبلے کو بھی ہے گرداب کو پینے کی ہوس

ہم کو تالاب کا تالاب ملا، پی ڈالا
پھر بھی باقی رہی مہتاب کو پینے کی ہوس

رنگ آنکھوں میں بھی لاتا ہے مگر اف تیری
جگرِ سوختہ خونناب کو پینے کی ہوس

دیکھ لے آئی ہے صحرائے شبِ ظلمت میں
چشمِ دنیا یہ تری خواب کو پینے کی ہوس

ہم کو شاعر نہ کہو یار منیب الرحمن
کبھی ہوسکتی ہے غرقاب کو پینے کی ہوس