اکھ کتھ باتھ ترجمس متعلق

trans

راتھ سپز اچانک نہج رسالہ کس وٹس ایپ گروپس منز ترجمہ کاری ہنزِ ضرورژ متعلق اکھ کتھ باتھ، یتھ منز میہ پننۍ خیالات پیش کرنک موقعہ میول۔ میہ دۆپ بہ کرکھ یم خیالات ییتہ نس مختصرا محفوظ:

میانہ نظرِ منز چھہِ ترجمکۍ زہ مقصد۔ اکھ گۆو ہیچھنک مقصد۔ یعنی ترجمہ کرنہ سیتۍ چھہ ترجمہ نگارس فایدہ میلان۔ سہ چھہ نوین نوین خیالاتن، تصوراتن، موضوعاتن، طریق اظہارن انزۍ منزۍ گژھان تہ تم کاشرس منز پھرنک تہ دوبارہ بیان کرنک ہنر ہیچھان۔ یمہ ساتہ اسۍ کانہہ فن پارہ کنہ زبانۍ منز پران چھِن، اسۍ چھِن سہ اکس سطحس پیٹھ سمجھان مگر ییلہ اسۍ اتھ ترجمہ کران چھہِ اسۍ چھہِ تقریبا سہ فن پارہ تخلیق کرنہ چہ عملہِ برابر کامہِ منز شریک سپدان۔ یۆہے چھہ امیک تربیتی پہلو۔ میانہِ خیالہ چھیہ سانہِ خاطرہ ترجمہ نگاری ہنز ضرورت امی پہلو کہ لحاظہ۔

ترجمک بیاکھ مقصد چھہ بییہ زبانۍ ہند یا بییہ کُنہِ فن پارک تجریہ پننین پرن والین دستیاب تھاوُن۔ امچ چھیہ نہ امہ کنۍ زیادہ ضرورت تکیازِ یمو زبانو پیٹھہ اسۍ ترجمہ کرتھ ہیکو یا اسۍ کران چھہِ تم زبانہ چھہِ اسۍ مہارت سان زانان۔ اسۍ ہیکوکھ تم فن پارہ اردو پاٹھۍ یا انگریزۍ پاٹھۍ پننس اصلس منزے پرتھ، ترجمچ چھیہ نہ کانہہ ضرروت۔ یمن ہند ترجمہ چھہ کار فضول، خاص ییلہ اسۍ کاشرِ کہ کھوتہ زیادہ بہتر پاٹھۍ یمے زبانہ پران چھہِ۔ اگر کنہِ تژھہِ زبانۍ یا کُنہِ تتھس چیزس ترجمہ کرنہ ییہ یُس نہ عام کاشرس ادیبس یا پرن والین دستیاب آسہِ، سۅ چھیہ بدل کتھ۔

ترجمہ کار سندِ خاطرہ چھہ دویمہِ زبانۍ ہندِ ادبک متواتر مطالعہ ضروری، تیلی ہیکہِ سہ تم چیز لٔبتھ یم ترجمس لایق آسن۔ ترجمہ کار کرِ تیلی ترجمہ ییلہ تس کُنہِ چیزس سیتۍ کانہہ ہشر پیدہ گژھہِ، موضوع، فن، تصورات، طرز اظہار بیتر کہ لحاظہ۔ ہنگتہ منگہ کُنہِ چیزس تھپھ دنۍ تہ ترجمہ کرن چھہ فضول۔ ترجمو سیتۍ چھہ نہ کُنہِ زبانۍ برژر گژھان۔ برژرک تصورے چھہ غلط۔  اتھ چھہِ زے مقصد یم میہ پیٹھہ کنہِ بیان کرۍ۔۔

فن ورتاونک طریقہ ہیچھنہ کہ تصورہ کنۍ چھیہ اسہِ ساروے کھوتہ زیادہ افسانہ چہ ترجمہ کاری ہنز ضرورت۔ یا کنہ حدس تام تصوراتی تنقیدی مضمونن ہنز۔

شہناز رشید سنز نٔو کتاب

shah

http://www.kashmirink.in/news/artliterature/a-bold-new-voice-of-kashmiri-poetry/538.html

 

Shahnaz Rashid has emerged as a grounded voice of today’s Kashmiri poetry. Considered an echo of Rafiq Raaz, he just did not crack the ascendancy of Raaz; he paved a way of supremacy for himself in a familiar yet neoteric language of signifying proportions. His stunning command of language helps him connect it to the contemporary mood and reflection in an effortless manner.His poetry apprises us of his nonpareil dexterity skills penetrating his ghazals and nazms equally. Shahnaz’s latest collection of poems, Door Pahan Dewaran Manz, his second in just ten years, is a book most of the Kashmiri poets have failed to harvest over a lifetime. I am convinced that the book will infuse a new genius into the garden variety of our literary scene.

Shahnaz’s ghazals have a unique diaphanous quality that we rarely witness in his contemporaries. We may debate about the presence of complexity of feeling, but undeniably there is no ambiguity of image or metaphor in his verse, which, however, does not exclude deeper or layered meanings from his poetry.This quality of accessibility, together with indigenous historico-cultural allusions, has allowed Shahnaz to accrue a widespread appeal.

In Shahnaz, we see an addition to the diversity of voices following tremendously successful Rahi of later years who as a prig had roughly made dogma out of his personal taste and talent. We badly needed an antidote to this esoteric tendency for art which poets like Shahnaz have provided. In poetry, being simple takes more skill and effort than being difficult. Poets often prove themselves clever but, as Shahnaz does, we mustunderstand and celebrate experience, otherwise known as life.

Shahnaz’s book contains 80 compelling ghazals and 40 persuasive nazms, laying out his 196-page journey through life’s “rainbow of loss and gain” that “frequently communicates that under the blue dome of the skywhatever we look at is a glass house of servility and ephemerality … as well as a courtyard of a towering house of awe.” A successful marriage of both perspectives is what Shahnaz’s poetry is all about.

It makes difference to have a poet’s sizeable amount of work in view to become aware of the things that occupy and obsess him, to learn to recognize his characteristic voice, his personal idiom. With a prompt second collection, Shahnaz has offered this opportunity of kosher discovery to his readers and critics for which we must be thankful.

 

زرد پنکۍ ڈیر — نگہت صاحبہ سنز شاعری

nighat

 

راتھ و ٲژ آفس منیجر اکھ پیکٹ ہیتھ یُس مظفر عازم صٲبن سوزمت اوس۔ پیکٹ وچھتھے تۆر میہ فکرِ زِ اتھ منز آسہِ نگہت صاحبہ سنز کتاب۔ بظاہر ٲس یہ سرپرایز تکیازِ عازم صٲبن ٲس نہ اتھ متعلق کانہہ مسیج سوزمژ مگر تاڑنے والے قیامت کی نظر رکھتے ہیں۔ پیکٹ کھولتھ گۆو کتابہِ ہند سرورق تہ امچ کتابت تہ طباعت وچھتھ دل خۅش۔ انسان دپان یُتھ کور چھہ تژھے گٔژھ کتابہِ اندر شاعری تہِ آسنۍ۔ امہِ کتابہِ ہندین کورن درمیان کژھ شاعری چھیہ، سۅ سرپرایز تہِ میج نہ کینہہ تکیازِ یہ کتاب واتنہ برونہہ ٲس نگہت صاحبہ سنز شاعری میہ عازم صٲبنی وساطتہ پرمژ۔ گویا سرپرایز دارد ولی ہیچ سرپرایز دارد۔ (یہ گۆو میون ٹنگہ فارسی)۔

کانہہ تہِ شاعری چھیہ میہ دۅن سطحن پیٹھ متاثر کران۔ اکھ امچ فارم تہ بیاکھ امیک نفس مضمون یعنی امیک باطن۔ واریاہ دپان یم ہیکوکھ نہ الگ کڈتھ مگر میہ نہ بیہان! فارم چاہے غزل آسہِ یا نظم یا بییہ کانہہ بلاے یا صرف ظاہری لفظہ ورتاو، سۅ کمہِ خوبصورتی، ٹکنیک، ذہانت تہ مہارت سان چھیہ شاعرن ورتٲومژ، سہ چیز چھہ گۅڈنیتھے میہ متاثر کران، حالانکہ اکثر چھیہ اتھ متعلق مایوسی گژھان۔ یہ چھہ شاعری ہند گۅڈنیک شرط زِ زبان تہ فارم ورتاونک گژھہِ سلیقہ آسُن۔ یہ چھہ نہ کم کینہہ زِ نگہت صاحبہ چھہ امیک سلیقہ حاصل سپدمت۔ اگر یہ سلیقہ آسہِ، واریاہ پرن والۍ گژھن امہِ کس باطنس متعلق خۅش فہمی منز، تکیاز باطن زانُن چھہ ہنا مشکل۔ اتھ متعلق ہیکن مختلف رایہ یا پرنیہ ممکن ٲستھ، یمہ کنۍ واریاہ پرن والۍ فارم ورتاونہ کِس سلیقسے شاعری تہ سورُے کینہہ مانان چھہِ۔ مگر میہ گژھہِ سرپرایز شاعری ہندس نفس مضمونس منز تہِ میلنۍ۔ نگہت صاحبہ سنزِ شاعری ہندس نفس مضمونس منز چھا کانہہ سرپرایز، تام تھاوۍ تون سۅ کتھ اتی۔

بہ کرہ نہ شک (کیازِ نہ تہِ ونہ بہ سیتی) مگر میہ بوز زِ کینہہ شخص چھہِ ونان نگہت صاحبہ چھہ کانژھا شاعری لیکھتھ دوان۔ پریتھ زنانہ شاعرس متعلق چھہ سٲنس سماجس منز گۅڈنی یۅہے خیال ذہنس منز یوان (حالانکہ کُنہِ ساعتہ چھیہ جان کم عمر مرد شاعرن متعلق تہِ یژھہ افواہ پھیلان)۔ اتھ متعلق چھہ شفیع شوق صٲبن ونُن زِ یہ شاعری لیکھتھ دنہ وٲلس گٔژھ گۅڈہ پانس یژھ شاعری تگنۍ۔ میہ چھہ نہ نگہت نہ شاعری متعلق کانہہ شک تکیازِ سانہِ شاعری ہند ابتدا چھہ زنانہ شاعر سندی دسۍ، سُہ تہِ تفکر دار شاعری۔ سانہِ شاعری ہند احساسی جوش تہِ چھہ زنانہ شاعر سندی بدولت یُس مہجورس تام ژھٹھ کٔڈتھ گۆو۔ نہ صرف ناودار شاعر بلکہ سانۍ زیادہ تر شاعری یعنی لکہ بٲتھ چھہِ تمام تر گمنام زنانہ شاعرن ہندی پروردہ۔ سانہِ شاعری ہنز آوازے چھیہ نسوانی روزمژ۔ کانسہ نسیم شفایی، رخسانہ جبین یا نگہت صاحبہ سند شاعر آسُن چھہ نہ تعجب بلکہ چھہ تعجب یہ زِ یہ کم تعداد کیازِ؟ امیک وجہ واتناوِ اسہِ نگہت صاحبہ سنزِ شاعری ہند نفس مضمونس کُن:

دم پھٹۍ کٔرس بہ وقتن
کم نغمہ ژورِ تھٲوم

میہ باسان نفس مضمونچ باقی سرپرایز تھاوون پرن والین کژ۔

اسونۍ دگ، لندنس منز زامژ اکھ شعرہ سۅمبرن

irshad

ییلہ اسۍ کٲنسہِ تہ شاعر، جدید تر شاعر سنزِ کلہم شاعری ہند تجزیہ کرو، ٲخر چھہِ اسۍ تتھ چیزس تام واتان یتھ اسۍ تمۍ سنزِ شاعری ہند جسٹ ونو۔ یمہ ساعتہ اسۍ ارشاد ملک سنزِ "اسونۍ دگ” شعرہ کتابہِ ہند تجزیہ کرو، امیک جسٹ چھہ نہ کٲنسہِ جدید شاعر سندِ کلہم تاثر نش مختلف۔ یہ چھیہ خوابن ہنز، دۅکھن ہنز، جدایی ہنز تہ راونچ شاعری۔ یہ تاثر چھہ شاعر اکہ بدل وتہِ قایم کران یۅس سانہِ سیاسی تہ کلچرل زندگی پیٹھہ نیران چھیہ تہ تورۍ کن واپس گژھان چھیہ۔

بنیادی طور چھہ ارشاد ملک اکھ کاشر شاعر، یُس نہ صرف غالب کٲشر شعرہ ذاتھ وژن ورتاوان چھہ بلکہ چھہ ازۍکہ زمانہ کین اظہاری ہیتن کن کم توجہ کٔرتھ وقتہ رنگۍ تہِ کاشرین وژن شاعرن سیتۍ پنن رشتہ جوڑان تہ تہندینے طور طریقن پیٹھ پٔکتھ پننین تہ پننہِ قوم کین غمن زیو دنچ کوشش کران۔ امۍ سند وژن ہیکون اسۍ کنہِ تہِ کاشرس وژنس لرِ تھٲوتھ، اکثر جاین چھہ ہیورے پہن۔

میہ باسان لندنس منز بہت یورپی شاعری ہنز تقلید کرنہ بجایہ کاشرین شاعرن تہ شعرہ اظہارن ہنز تقلید چھیہ زیادہ معنی خیز۔ شعرہ سۅمبرنہِ منز چھہ جایہ جایہ ظاہر زِ ارشاد ملک چھہ وژنہ چہ زبانۍ ہند پریہ ون ورتاو کران، تہ امہ کین لوازماتن ہند سیٹھا خیال تھاوان۔

مثالہِ پاٹھۍ یم وژن کٲتیا شوبہ دار چھہِ:
لالہ یکھنا از سون سالے لو
ہی پوشن کریو مالے لو

متہِ ژورِ مو تھاو مارۍ موند پان
ژے میون زو چھکھ ژے میون جان

یم غزل تہِ چھہِ متاثر کن:
پگہہ کہ طمع ہے از مشرووم
راز نو عشقن بووم زانہہ

سیکھ چھیہ نہ ٹھہران زالین منز
اۆش چھہ نہ ٹھہران ٹارین منز

مثالہِ پاٹھۍ یم شعر کٲتیا مارۍ مندۍ چھہِ:
زیٹھہِ کھوتہ زیوٹھ وچھم خواب راتۍ راتس
کلۍ تہریو پیٹھۍ کھوت سہلاب راتۍ راتس

دۅہلہِ ما سنا یم چھہِ مندچھان تاپلس
اوے ما چھم پھۅلان گلاب راتۍ راتس

یہ چھہ معجزک اثر زِ زندہ رودس
لج میہ کمۍ سنز نظر زِ زندہ رودس

میانہِ بدلہ کمۍ سنا دژ گردن
کمۍ سا نومروو سر زِ زندہ رودس

میانی کھورہ تلہ درامژ راتھ
فرشس وہرنہ آمژ راتھ

 

اکھ غزل چھہ پورہ پیش:

ڈیکہ سے پوز چھی ستارے بدل
دریاو سے چھی کنارے بدل
زمینہِ دیت اسہِ وزِ وزِ ساتھ
ٲسۍ آسمانکۍ اشارے بدل
شہل دوان دۅس تاپس منز
رودکۍ مگر اشارے بدل
پوشن چھہِ زندگی کینژن دۅہن
کنڈین مگر گوشوارے بدل
ہارنس پنن چھہ فایدہ الگ
زیننہ نس مگر خسارے بدل
ہوشک بوشا ذہنس منز
آسان دلس چھیہ تارے بدل
ارشاد ہٲل کر سختی وچھ
موتکۍ آسان نظارے بدل

یہ شعرہ کتاب چھیہ کاشرِ آہنگچ اکھ زندہ مثال یمکۍ وژن کیو غزل فارسی عروضس تابع نہ ٲستھ تہِ وزن دار چھہِ۔ میہ چھیہ وۅمید ارشاد ملک سند شعری سفر روزِ جاری تہ امۍ سند شعری کینواس تہِ لبہِ وسعت۔

منظومہ

term

 

میہ وچھ سانۍ کینہہ نثر نگار چھہِ کینژن بٲتن ہندِ خاطرہ لفظ منظومہ ورتاوان۔ منظومہ لفظ چھہ عربی اصطلاح یُس نہ اردو والیو تہِ زیادہ ورتوو، تکیازِ تمو ورتٲو امہ خاطرہ امہ چی بدل شکل نظم۔

منظومہ لفظک ورتاو کو٘ر رحمن راہی ین شروع۔ امۍ لو٘ب یہ فارسی والین نش۔  فارسی والۍ چھہ اتھ ترین معنی ین منز ورتاوان۔ اکھ تمن بٲتن ہندِ خاطرہ یم عربی شعری صنفہ تہ عروض ینہ برونہہ ایرانس منز شاعری ہندِ رنگۍ لیکھنہ ٲسۍ یوان تہ یمن ہندۍ کینہہ نمونہ دستیاب ٲسن ہیتۍ متۍ گژھنۍ۔ یعنی یہ نہ غزل اوس، رباعی اوس، مثنوی بیترِ اوس تہ عروضس پیٹھ اوس نہ وننہ آمت۔  جدید دورس منز آو یہ لفظ  اتہِ نظم اصطلاح خاطرہ تہِ ورتاونہ۔ کانہہ تہِ چیز یُس نہ روایتی عربی فارسی صنفن منز اوس تتھ آو فارسی یس منز منظومہ وننہ۔ تریم معنی چھس نظام۔ کانہہ ترتیب دنہ آمت چیز۔ مثلا نظام شمسی۔  فارسی یس منز گو٘و یہ منظومہ شمسی۔

کاشرس منز چھہ اکھ اصل لفظ بٲتھ موجود یُس پرانین تتھین چیزن ہندِ خاطرہ ورتاونہ یوان چھہ یم نہ صرف گیونہ آسن آمتۍ بلکہ مخصوص عربی فارسی صنفن یا مخصوص اصطلاحن ہندۍ محتاج آسن نہ۔ اسہِ نش چھہ وژن تہِ بٲتھے۔ پرانہِ  کاشرِ شاعری (زیادہ تر ٲس لکہ شاعری اسہِ نش)  ہندِ خاطرہ اوس نہ کانہہ اصطلاح ورتاونہ یوان۔ شاعرن اوس نہ اتھ سیتۍ کانہہ غرض زِ یُس چیز تمو وو٘ن اتھ کیا ونو تاکہ یہ ییہ یتھوے باقی چیزو نش الگ کڈنہ۔ امہ رنگک تنقیدی شعور اوس نہ پرانین شاعرن۔ یہ شعور گو٘و فارسی دورس منز شروع۔ چناچہ چھہ گۅڈنچہ لٹہِ تتھ چیزس یتھ اسۍ از وژن ونان چھہ "غزل” وننہ یوان۔ یعنی وژن شاعر ٲسۍ پننس وژنس غزلے ونان۔ وژن اصطلاح آو جدید دورس منز ورتاونہ۔

از چھہ اسہِ نش واکھ، شروکۍ، وژن، غزل، مثنوی، رباعی، نظم اصطلاح موجود۔ نظم چھہ غیر روایتی شاعری ہندِ خاطرہ تہِ اردو والین ہندۍ پاٹھۍ ورتاونہ یوان۔ روایتی شاعری منز یُس چیز نہ پیٹھمین اصطلاحن پیٹھ وترِ تتھ چھہِ اسۍ بٲتھ ونان۔

یہ منظومہ کۅس بلاے چھیہ؟ کینہہ لوکھ چھہِ علم ہاونہ خاطرہ گو٘بۍ گو٘بۍ تہ غیر مانوس لفظ تہ اصطلاح ورتاون۔ یہ ما چھہ تموے لفظو منزہ؟

لیکسیفانسزم!!!

تنہا ردیفکۍ نفیس شعر

lone

فیس بک تنہا ردیف وٲلس مشاعرس پیٹھ یس تبصرہ اقبال فہیمن کور، تس چھہ پورہ پورہ حق کتھ کرنک، یمہ اندازہ تس خوش کرِ تمہ اندازہ۔ یُس نہ اقبال فہیمس ٹھیک پاٹھۍ زانہِ سہ گژھہ پریشان ہیو۔ ژکھ تہِ کھسیس۔

ییلہ بہ کینہہ فرماوان چھس، واریاہ چھہ تیتھ آسان یس نہ میہ ونن تگان چھہ تہ واریاہ تیتھ یتھ نہ کانہہ معنی نیران چھہ۔ یہ مسلہ چھہ نہ میونے اوت بلکہ شاید سارنے ادیبن ہند۔

اقبال فہیم نین کینژن کتھن سیتی چھہ نہ میہ اتفاق۔ مثلا لفظ تنہا۔ یم چھہ ونان امیک معنی چھہ نہ "الون (کنے زون)” بلکہ "الوف نیس، ودڈراول، ان کنسرنڈ، ڈیٹیچڈ”۔

بہ چھس ونان تنہا لفظک بنیادی معنی چھہ تی یتھ اقبال انکار کران چھہ یعنی اکیلا، جدا۔ باقی یم معنی امی درج کری متی چھہ، تم چھہ نہ بنیادی معنی بلکہ مختلف سیاقن ہند مطابق علاوہ معنی۔۔ یہ چھیہ شاعرس پننی مرضی سہ کتھ معنی یس منز ورتاوِ کنہِ لفظس۔

یمن شعرن منز تنہا کنہ تہ معنی یس منز ٲسۍ تن، یمن ہندس بہترین شعر آسنس کرہ نہ بہ انکار۔

محمد رمضان:
آسہِ کانہہ تارکھا وچھاں اسہ کن
گاشہ لومبکھ ژھٹاں ژھٹاں تنہا

مظفر عازم:
پوت کٹھس منز کھٹتھ تھواں تصویر
یوت نظر پوت نظر دواں تنہا

شانتی ویر:
تاپہ پھوتۍ ہیتھ ہپارۍ ژلۍ باپارۍ
ہردہ پن سانۍ پے وٹاں تنہا

شہناز رشید:
نجدہ ون کیازِ موٹھ وۅں درویشن
کیازِ پیوو شہر عاشقاں تنہا

فیاض دلبر:
ژۅن کٹھین ہند مکانہ کتھ لوگ وونۍ
دۅن شہن منز بہ چھس بساں تنہا

رفیق راز:
اندرہ کُس تام سرۍ یہ چھس پریزلان
شینہ مٲنیا چھیہ اکھ گلاں تنہا

رخسانہ جبین:
ٲنتھہ روستے سوال نظرو سیتۍ
ٲنہ اندری یہ کس پرژھاں تنہا

علی شیدا:
بالہ پیٹھہ وچھتہ زن پشس سیتۍ پش
آنگنن پھیر پریتھ مکاں تنہا

یتی نہ، پریتھ غزلس منز چھہِ اکھ اکھ زہ زہ شعر یم یمنے شعرن ہندۍ پاٹھۍ داد طلب چھہ۔ بہ ہیکاھ نہ ساری شعر درج کرتھ تکیاز میہ چھہ نہج رسالس تمن شعرن ہند انتخاب سوزمت۔

بہ ونہ بییہ اکہ لٹہ شاعر کتھ معنی یس منز ورتاوِ لفظس، تسنز مرضی۔

باقی یس الگ الگ شاعرن پیٹھ تبصرہ چھہ، تتھ متعلق چھہ نہ میہ کینہہ ونن۔ سو چھیہ اقبال فہیم صابنی راے۔ صحیح تہِ ہیکہ ٲستھ، غلط تہِ ہیکہ ٲستھ۔

فیس بک طرحی مشاعرس پیٹھ تبصرہ

 

شرکا: رفیق راز, شانتی ویر کول, ایاز رسول نازکی, برجناتھ بیتاب, شہناز رشید, خالد بشیر, محمد رمضان, علی شیدا, نثار عظم, ظفر مظفر, الیاس آزاد

 

یہ تبصرہ چھہ  فیس بک کٮن گۅڈنکٮن دۅن مشاعرن منز  (2011) فی البدیہہ، لگ بگ فی البدیہ تہ فرصت سان وننہ آمتین غزلن پیٹھ۔ یمن مشاعرن منز نیو کہنہ مشق کیو تازہ وارد  شاعرو برابر دلچسپی سان حصہ ۔ تریمس مشاعرس منز مظفر عازم سنزِ شرکژ سیتۍ ہریوو اتھ سلسلس وقار۔

غزلس منز چھیہ ذاتی تجربن زیو دنچ کمے پہن ریوایت۔ زیادہ تر چھہ یہ مضمون آفرینی سیتۍ آوراونہ آمت تہ اکثر چھہ یمن مضمونن ہندۍ محرک قافیہ تہ ردیف رودۍ متۍ، یمہ کنۍ اتھ صنفس منز اکھ اجتماعیت تہ اکھ یکسانیت پیدہ گژھنک خدشہ روزان چھہ۔ حقیقت چھیہ یہ زِ مخصوص طرز تہ مخصوص نکتہ نظر تہِ چھہ کمنے شاعرن باگہِ یوان۔ غزلس چھیہ اکثر نوِ زمینہ تہ نوۍ ردیف قافیہ نہ صرف تازہ دم کران بلکہ امکان تہِ  بخشان۔ یمن غزلن منز   تہِ چھہِ امہ رنگۍ کینہہ تجریہ میلان۔ اکھ تجربہ یعنی متحرک حرفس پیٹھ اند واتن وول قافیہ/ردیف چھہ بیک وقت عروضس سیتۍ تہِ تعلق تھاوان۔ فارسی اردو عروضی مشقہ کنۍ  چھیہ نہ مصرعہ کس اندس پیٹھ متحرک حرفس کانہہ جاے۔ امہ بندشہ کنۍ ٲسۍ نہ کاشر ۍ غزل گو تم بے شمار قافیہ/ردیف ورتاوان یم یک حرفی لفظ چھہِ تہ متحرک الاخر چھہِ۔ مثلا بہ، ژہ، تہ، تہِ، ہہ، بیترِ ۔ یتھے پاٹھۍ چھہِ بے شمار فعل تہِ مثلا کرہ، کرِ، گژھہ، گژھہِ، ونہِ، روزِ، روزہ، بیترِ۔وژنن منز ٲس نہ وزنچ کانہہ بندش مگر اتھ منز ٲسۍ گیونہ کنۍ ژھوٚٹٮن مصوتن پیٹھ مشتمل لفظ زیٹھراونہ یوان۔ خال کنُہِ لل واکھس، شیخہ شروکس منز یا نایاب پاٹھۍ کنہِ وژنس منز چھہ متحرک آوازِ پیٹھ مصرعہ اند واتان۔ امین کاملن کوٚر غزلس منز یہ تجربہ  ابتدایی دۅہنے منز تہ تمہ پتہ رود سہ یم متحرک قافیہ/ردیف والۍ غزل منزۍ منزۍ ونان مگر تس ورٲے تل نہ اتھ خاص پاٹھۍ کٲنسہ فایدہ ، حالانکہ اتھ منز چھہِ سانہِ زبانۍ ہندِ نسبت واریاہ امکان موجود۔ اتھ تجربس تُل پتمین شٮن ستن ورین دوران محمد رمضانن فایدہ۔ تمۍ لیکھۍ غزل ہا یمن ہندۍ قافیہ/ ردیف متحرک حرفن پیٹھ اند واتان چھِہ (مطبوعہ نیب)۔ تمۍ ورتاوۍ متحرک حرفن پیٹھ اند واتن والۍ فعل تہِ ردیفن منز۔ مثلا:

رنگ برگن چھکہِ، خوشبو ژھٹہِ، دل شاد تہِ کرِ
تیتھ تہِ کانہہ پوش یمس باد صبا یاد تہِ کرِ  (محمد رمضان)

یوٚہے تجربہ نظرِ تل تھٲوتھ دیت میہ متحرک مصرعس پیٹھ اند واتن وول اکھ طرح، اردو شاعر فرحت احساس سندِ اکہ اردو مصرعک ترجمہ

ہتٮن ہہ دشت مسلسل یتٮن مسلسل بہ

اتھ پیٹھ آیہ کم از کم 7 غزل وننہ یمو منزہ تقریبا سٲری فنی تہ معنوی لحاظہ سیٹھا مارۍ مندۍ چھہِ۔ یمن غزلن منز چھہ اتفاقا تقریبا پریتھ شاعرن گاش، ژونگ، واو استعاراتی طور مختلف معنی برآمد کرنہ خاطرہ ورتاوۍ متۍ تہ یم چھہِ پزۍ پاٹھۍ پننہِ پننہِ غزلہِ منز بہترین شعر:

رفیق رازہ مٮہ نارس اندر زمانا گوٚو
نہ تیز دروتھ بناں چھُس نہ تیز کرتل بہ  (رفیق راز)

میہ روٚس نہ کانہہ تہِ اکھا واوہ ہالہِ زالاں ژونگ
گوٚمت خدایہ ظہرۍ پورہ پاٹھۍ پاگل بہ  (شہناز رشید)

چھہ میون شہہ تہِ گوٚبے میانہِ براندہ کس ژٲنگس
ژہ سونچ پانہ زِ واوس ہیکا کڈتھ کل بہ  (برجناتھ بیتاب)

چھہ گاشہ نوو ژ‎ۅاپارۍ اچھ کٔرتھ ژرژان
چھکن کپارۍ الہی یہ رٲژ ہند ملبہ  (محمد رمضان)

وچھاں یتھے بہ چھُسن آنگنس اژان یہ گاش
دوان تارۍ برس چھس تہ دارِ ہانکل بہ  (نثار عظم)

ہہ گاش ییہ تہ خبر ہییہ نہ رٲژ پہرن تام
فضول دارِ پٹٮن کیازِ تھاوہ ہانکل بہ  ( الیاس آزاد)

رفیق راز سندس شعرس منز اگرچہ گاشک استعارہ ورتاونہ چھہ نہ آمت مگر نارچھہ بہرحال گاش تہِ ژھٹان۔ اتھ شعرس منز چھہِ بیک وقت زہ متضاد مضمون۔ گۅڈنچہ نظرِ منز چھہ باسان زِ متکلم چھہ نارس منز ٲستھ تہِ نہ دروت بنان تہ نہ کرتل، مگر "تیز” لفظہ چہ کلیدی حیثیژ کن وچھتھ چھہ یہ مضمون برونہہ کن یوان زِ نار ہیکہِ درٲتس یا کرتلہِ  آکار دتھ مگر تیز ہیکیکھ نہ بنٲوتھ، چاہے تم کٍتس تہِ کالس اتھ اندر تپاونہ یِن۔ یہ چھہ "ساری دراے پۅختہ تے بے دراس اوم”  کہ قبیلک اکھ نفیس مضمون ۔شہناز سندس شعرس منز چھیہ ناسازگار حالاتن منز کوشش کران روزنچ کتھ یۅس امہ کنۍ بظاہر پاگل پن باسان چھہ تکیازِ یہ شخص چھہ اتھ عملہِ منز کُنے زوٚن۔ ساری چھہِ لوٚب کتھتۍ متۍ۔ یہ مضمون تہِ چھہ نہ نوٚو البتہ موجودہ حالاتن مدنظر چھہ برمحل۔ برجناتھ بیتابن چھہ پننس شعرس منز اکھ بالکل نوٚو مضمون اوٚنمت یمہ مطابق ژونگ اکہ نوزک روایژ ہند استعارہ بنان چھہ یُس امس شخژہ سند گرہ روشن کٔرتھ  چھہ۔ اتھ روایژ چھہ امس شخژہ سنزو زندہ روزنہ چیو پننیومجبوریو کنۍ تہِ خطرہ لاحق۔ یمس شخژس امہ روایژ ہند یوت خیال آسہِ زِ سہ کرِ یہ دپۍ زِ تہِ شہہ ہینس پیٹھ تہِ ضبط، سہ کتھہ پاٹھۍ دِیہ تتھٮن اسبابن دعوت یم اتھ روایژ پورہ پاٹھۍ ژھیتہ نِن کٔرتھ۔ امہ مضمونچ عذرخواہی چھیہ بیتابس اکس خاص صورت حالس پیش نظر سنیمژ یس اسہِ سارنی ویوٚد چھہ۔ محمد رمضان سند شعر تہِ چھہ بیتاب سندِ شعرکۍ پاٹھۍ اکھ نوٚو مضمون ہیتھ۔ مگر اتھ منز چھہِ گاشچ پرسانفیکیشن (اچھ کٔرتھ ژرژان) تہ "رٲژ ہند ملبہ” ہش اختراع کرنہ آمژ ترکیب تہ امکۍ استعاراتی معنی زیادہ توجہ طلب۔ رمضانن چھہ پننس غزلس منز غلبہ/ طلبہ/ملبہ ہوۍ قافیہ ورتٲوتھ جدتس کٲم ہیژمژ۔ یہ شعر چھہ معنوی طور مبہم تہ فکرمندی ہنز دعوت دوان۔ متکلمس چھہ منہدم رٲژ ہند ملبہ بار گراں بنیوومت یس نہ تس نیبر کن چھکنس وار چھہ۔ امچ شکایت خدایس کن کٔرتھ چھیہ امچ معنوی تہہ داری ہران۔ نثار عظم سندس شعرس منز چھیہ نہ فکرمندی مگرامۍ تہِ چھہ گاش رمضاننۍ پاٹھۍ شخژوومت تہ شعرس منز اکھ نوٚو مضمون تہ معنوی امکان پیدہ کرۍ متۍ۔ گاشس سیتۍ "یہ” لفظک ورتاو چھہ توجہ طلب۔ اکثر چھہِ یتھۍ ہریمانہ لفظ وزنہ برابری خاطرہ تولس تراونہ یوان مگر یہ شعر چھہ امۍ لۅکٹۍ لفظن کتہِ کور واتنوومت۔ شعرس چھہِ کم از کم زہ معنی ممکن۔  یہ گاش چھہ نہ عام گاش یا سہ گاش یمچ توقع چھیہ بلکہ تیتھ گاش یتھ متکلم "یہ گاش” ؤنتھ لگ بگ طنز کران چھہ۔ متکلم چھہ نہ اتھ قطعا گرس اندر دعوت دنہ خاطرہ تیار۔ غیر طنزیہ معنی ہیکیس یہ نیرتھ زِ متکلم چھہ نہ گرہ کٮن سِرن ننیر گژھنہ کہ خدشہ کنۍ گاشس اندر ینچ کانہہ وتھ دوان۔ دۅشونی صورژن منز چھہ یہ شعر المناک صورت حال پیش کران۔ نثار عظم سند شعرس قریب چھہ الیاس آزادن شعرمگر اتھ منز چھہ اتھ مخالف مضمون گنڈنہ آمت یس سیٹھا دلچسپ چھہ۔ یہ مضمون تہِ چھہ نوٚو تہ نایاب تہ اکھ تیتھ صورت حال خلق کران یس سیٹھا معنی آفرین چھہ۔ امہ خدشہ زِ گاش ہییہ سانٮن رٲژ پہرن تام حساب، چھہِ اسۍ بلیک آوٹ کٔرتھ ینہ والہِ وقتکۍ امکان پانس پیٹھ حرام کٔرتھ نوان۔ یہ چھہ اکھ بہترین مضمون۔

یم ساری شعر پٔرتھ چھہ یقین سپدان زِ سانۍ نوۍ نوۍ شاعر چھہِ نہ صرف نوٮن استعارن تلاش کران بلکہ پرانٮن استعارن منز تہِ نوۍ امکان تہ نوۍ معنی پیدہ کرنچ سۅد بۅد تھاوان۔ پیٹھہ کنہِ دنہ آمتۍ ہوۍ کامیاب شعر چھہِ پزۍ پاٹھۍ کاشرِ شاعری ہنزِ خۅش آیندگی ہنز ضمانت پیش کران۔

پیٹھمہِ طرح کس "بہ” ردیفس مقابلہ اوس بییس طرحس منز "سٲری” ردیف وول رفیق رازُن اکھ مصرعہ دنہ آمت۔ اتھ طرحس پیٹھ موصول غزلو منزہ چھہِ کینہہ شعر پیش یم توجہ طلب چھہِ۔

ژانگۍ ہوۍ اسۍ راتھ کیت شولاں چھہِ سٲری
زیر لج پردس تہ بس لرزاں چھہ سٲری (رفیق راز)

شرۍ جماتھا چھم تہ گرہ چھم ونہِ تہِ وہرتھ
کُس اتر کوٚرمت یہ چھکھ مندچھاں چھہِ سٲری (شانتی ویر)

اکھ ہوا رنگ، آبہ جۅے، بلبل تہ جنگل
یتھ دلس گدرس میہ تنبلاواں چھہِ سٲری (خالد بشیر)

ٲس کمہِ پوشچ سۅ خۅشبو اسہِ ژۅاپارۍ
وۅنۍ ستن وارٮن اندر ژھاراں چھہِ سٲری (محمد رمضان)

گاش کوٚرمت چھکھ دفن غارن گۅپھن منز
انہِ گٹس منز قد پنن میناں چھہِ سٲری (ظفر مظفر)

یس وسے سونچاں بہ دمہا نالہ اتھ منز
یتھ سیکستانس توے زاگاں چھہِ سٲری (نثار عظم)

رفیق راز نہِ غزلک مطلع چھہ اکھ پراسرار صورت حال پیش کران چھہ، یتھ منز  نامعلوم خوف، پردہ، شولونۍ ژانگۍ اکھ داستان بیان چھہِ کران یتھ سانہِ نفسیاتی زندگی سیتۍ تعلق باسان چھہ۔ شانتی ویر سند شعر چھہ غزلہ کیو روایتی مضمونو نیبر نیرتھ اکس خاص سماجی، اقتصادی صورت حالس کن اشارہ کران۔ غزلکۍ ایمایی مضمرات چھہِ ییتیاہ قوی آسان زِ میہ چھہ شانتی ویر سند یہ شعر غالب سند مشہور شعر یاد پاوان” ہزاروں خواہشیں ایسی۔۔۔” خالد بشیر سند شعر چھہ اکھ عام مضمون اکس خوبصورت اندازس منز پیش کران۔ یہ شعر چھہ سٲنس مخصوص سیاسی صورت حالس کن تہِ اشارہ کران یتھ منز عام انسانہ سنز سادہ مزاجی ظاہر چھیہ۔ محمد رمضان سند شعر چھہ ہاوان زِ تمن چیزن ہندس راونس پیٹھ کتھہ پاٹھۍ  چھہ انسان پایس پیوان یم سہ  فار گرانٹڈ نوان چھہ۔ یہ شعر چھہ یقین تہ روحانی قدرن ہندس راونس کن اکھ بلیغ اشارہ۔ ظفر مظفر سند س شعر س منز چھہ گاش غارن منز دفن کرُن اکھ دلچسپ تضاد پیش کران۔ امہ شعرک علامتی پہلو چھہ ظاہر۔ یہ شعر گژھہِ پتمہ طرح کٮن گاش کس استعارس سیتۍ تعلق تھاون والٮن باقی شعرن سیتۍ پرُن۔ نثار عظم سند شعر تہِ چھہ سیٹھا دلچسپ ۔یتھ  بیہ وقعت سیکستانس کن کانہہ کانہہ مجبورا لگان اوس تتھ چھیہ تیژ تھپہ تھپھ زِ پریتھ کانہہ چھہ یہ دپۍ زِ تہِ زاگان۔ یہ شعر چھہ جبر تہ مجبوری ہندِ حبسہ دمک صورت حال پیش کران ۔

بیاکھ طرحک مصرعہ اوس عبدالاحد آزاد سند اکھ مصرعہ "آسمانن دامنس تل رٹ زمین”۔ اتھ پیٹھ وننہ آمتٮن غزلن ہندۍ زیادہ متاثر کرن والۍ کینہہ شعر چھہ درج:

اسۍ چھہِ کوتر لامکانکۍ وپھ تُلو
تل پتالس سیتۍ کرۍ تن أٹ زمین (رفیق راز)

سیتۍ اوسم شنیہس منز سرۍیہ ژونگ
ٲس شانن پیٹھ میہ تجمژ مٔٹ زمین (ایاز رسول نازکی)

آسمانچ شبنم افشانی بجا
وقتہ کٮن زخمن چھیہ مرہم پٔٹ زمین (محمد رمضان)

تالہِ پیٹھ دوٚدمت شہل ون یارِ ہند
تل پدٮن شیدا چھیہ اڈ دٔز ۂٹ زمین (علی شیدا)

اتھ طرحس منز اوس غیر مستعمل قافیہ  یمہ کنۍ شعر بناونۍ مشکل تہِ اوس تہ پرامکان تہِ۔ رفیق رازن شعر چھہ انسانہ سنزِ روحانی حقیقژ کن اکھ بلیغ اشارہ۔ انسان چاہے کنہِ تہِ سنگین دۅلابس پھسہِ، سہ ہیکہِ نہ تتھ منز زیادہ کالس قید روزتھ یوٚت تام تسند خمیر تہ ضمیر صاف آسہِ۔ تقریبا یژھے ہش کتھ وننہ خاطرہ یم پیکر تہ استعارہ ورتاونہ آمتۍ چھہِ تم چھہِ سیٹھا دلچسپ۔ کوتر چھہِ تمن جاناوارن منز   یم زمینہِ تھوٚد آسمانس منز پرواز کران چھہِ۔ تلپتال چھیہ سۅ جاے یمہ منزہ نیرُن مشکلے اوت نہ بلکہ ناممکن تہِ چھہ۔ وپھہِ منز چھہ موٚر ترٲوتھ ژلنک تہِ معنی موجود۔لامکان، تل پاتال، کوتر  لفظن ہند ورتاو ہ تہ زمین تہ تل پاتال سیتۍچھہ اتھ شعرس منز داستانوی رنگ پیدہ گوٚمت۔ ایاز رسول نازکی چھہ عجیب غریب صورت حالک اظہار کران۔ اتھ منز تہِ چھہ اکھ نیم داستانوی فضا قایم گژھان یتھ منز سرۍیہ ژٲنگس برابر مۅژان چھہ تہ زمین چھہ مچہ ہندۍ پاٹھۍ شانن لدتھ متکلم شنیاہ کس سفرس پیٹھ نیران۔ یتھٮن شعرن چھہِ نہ لفظی معنی قایم گژھان بلکہ چھہ اکھ مبہم تاثر وۅتلان یس معنوی امکاناتن کن اشارہ کٔرتھ ہیکہِ۔محمد رمضان سندس شعرس منز چھیہ قول نبنچ قابلیت موضوع مطلب تہ ارتکازہ کنۍ پیدہ گمژ۔ یہ چھہ غالب سند شعر "رگ لیلی کو خاک دشت مجنوں ریشگی بخشے” تہ اقبال سند شعر "آسماں تیری لحد پر شبنم افشانی کرے” دۅشوے یاد پاوان تہ یمن دۅشونی شعرن ہندۍ معنوی امکانات چھہِ اتھ منز داخل گژھان یم شعر کس مبہم صورت حالس روشن کران چھہِ۔ علی شیدا سندس شعرس منز چھہ تتھٮن مشکل حالاتن ہند اظہار  یم سانۍ حقیقت تہ  سون اعتبار دۅشوے اکی رنگہ اذیت ناک بناوان چھہِ۔ یہ ہشر چھہ ون یارِ  (اعتبار/یقین) تہ اڈ دز ۂٹ (حقیقت) سیتۍ قایم گژھان۔ ون یٲر نہ بلکہ چھہ ون یارِ ہند شہل دوٚدمت یس سانہِ اعتبارک آسن، نہ آسنس منز تبدیل کران چھہ۔

یمن مشاعرن منز یتھۍ یتھۍ شعر برونہہ کن یُن چھہ کاشرِ غزلیہ شاعری ہندٮن توقعاتن منز بے شک  ہرٮرکران۔

شاعری : عشقچ بازیافت

dawlat
اسہِ اوس اکھ شریف نفس دوستا اکھ۔ امۍ سے سنیوو اکس خوبصورت زنانہِ ہند عشق۔ میہ لج امچ خبر۔ کینہہ کال گوو، یہ آو میہ نش تہ دوپن بوز نظم۔ بہ رووس۔ میہ دوپ امس تہ نظمہِ کیا کٲم؟ اچھا امس مسمات ہند ناو مانۍ تو تہۍ کینژھا مثلا تبسم یا بدل کینہہ۔ فی الحال مانو اسۍ تبسمے۔ امۍ دوستن ہیوت کلام بوزناون، دوپن: "کہیں وہ تبسم تو نہیں، وہ تبسم تو نہیں”۔ اکہِ دۅیہ لٹہِ وونس نہ میہ کہنی۔ امۍ دوپ چلو منیبس تور نہ فکرِ ، امس نش آسو کلام بوزنٲوتھ پنن بوس لوژراوان۔ مگر میہ روٹ یہ اکہِ لٹہِ۔ دوپمس "یہ تبسم کۅسا چھیہ؟” یہ ہیوتن وۅشلن۔ اسہِ باسان اگر کٲنسہِ ہند عشق گوو، سۅ گیہ بدمعاشی تہ یہ اوس شریف انسان! بہرحال، امس گیہ گٹھہ کوجہ تہ اتھۍ منز ووتھ "سہ چھنا میون دوس، قریبی دوس۔۔۔” مانۍ تو امۍ سندس دوستس چھہ ناو نذیر تبسم یا یتھے ہیو کانہہ ناو۔ فی الحال مانۍ تون نذیر تبسمے۔ دوپن "یہ چھنا یہ نذیر تبسم، امۍ سنزے یاد چھیم آمژ۔” میہ دوپمس اچھا تورم فکرِ۔ امس آو بتھس پنن رنگ واپس۔

امہ کہانی ہند مطلب چھہ یہ زِ شاعر بننک اکھ بہانہ چھہ پتھ وتھ عشق رودمت۔ عشقک اظہار یا عشقہ چہ ناکامی ہند دۅکھ۔ یہ ہیکہِ کانہہ ٹوٹھ شخص راونک دۅکھ تہِ ٲستھ۔ کینہہ چھہِ خدایہ سندس عشقس منز گرفتار گژھان، یا عشق رسولس منز یا دین کس عشقس منز۔ مثلا سانۍ نوۍ شاعر مشروع نصیب آبادی تہ منظور خالد۔ عشقس چھہِ مختلف پہلو۔ کینژن چھہ بدل عشقک بہانہ گژھان۔ مثلا سون ارشاد ملک یا الطاف اندرابی۔ یہنزِ شاعری ہند بہانہ چھہ کشیرِ ہنزِ آزادی ہند عشق یا تمہ چہ ناکامی ہند دۅکھ، کشیرِ نش دورِ رک دۅکھ۔ یہ تہِ چھہ اکھ عشق۔ اکثرن چھہ عشقک یہ بخار جلدے وسان تہ تہنزِ شاعری ہنز رفتار تہ شوق تہِ چھہ ژھۅکان۔ مگر یم برونہہ پکان چھہِ تم چھہِ امہ ابتدایی جنونہ منزہ نیران۔ تتۍ نے چھہِ نہ بند گژھان۔ برونہہ پکن والۍ چھہِ یہ گۅڈنیک عشق منسٲوتھ شاعری ہندس فنس تہ زبانۍ ہندس تخلیقی ورتاوس منز غم دفایی کران تہ بحیثیت اکھ باضابطہ شاعر برونہہ کن یوان۔ یمن ہنزِ دلچسپی ہند کینواس چھہ ہران۔ یہندِ عشقک کینواس چھہ ہران۔ یم چھہ لٲلہِ ہندس جنونس منز ادبچ دشت نوردی شروع کران۔

یہ دشت نوردی چھیہ عشقک اکھ ضروری حصہ۔ یہ دشت نوردی چھیہ عشقس اکھ وسیع معنہ مطلب دوان تہ اتھ تیزی بخشان۔ یمن ژۅشونی شاعرن تہ باقی واریاہن شاعرن یمن منز بہ زبردست شعری قوت وچھان چھس، چھہ میون مشورہ یی زِ اکۍ سے جایہ چھہ نہ بند گژھن۔ خدایہ، رسول، قوم ہیکوکھ اسۍ مختلف انسانی تجربن منز تہِ لٔبتھ۔ اسۍ ہیکو گلابس پیٹھ شعر ؤنتھ، تارکس پیٹھ نظم ؤنتھ، بسہِ ہنزِ سوارِ پیٹھ شعر ؤنتھ، ٹرینہ ہنزن سوارین پیٹھ نظم ؤنتھ تہ "کہیں وہ تبسم تو نہیں” وننہ ورٲے،تمن ہندِ مشاہدہ چہ باریکی منز پننہ پننہ شوقچ تہ عشقچ بازیافت کٔرتھ۔

khone jigar

شاعر چھہ قطرس منز سمندر بند کران تکیازِ امۍ سنز نظر چھیہ قطرس منز سمندر وچھان۔ یہ چھہ نہ قطرن منز بند گژھان۔ شاعرے چھہ سانہِ سماجک سہ نادرشخص یمس عالم انسانی یس اکی نظرِ وچھنک مۅکجار حاصل چھہ۔ شاعر ہیکہِ نہ خانن منز بند گژھتھ۔ شاعر چھہ اکس مخصوص زبانۍ تام اتفاقی طور محدود ضرور آسان مگر امۍ سند تخیل، امۍ سند سوچ چھہ توت تام واتان ییتہِ زبان صرف اکھ وسیلہ بنان چھیہ۔ یہ چھہ اتھ وسیلس تہِ پٲراو کران تکیازِ یہ چھیہ امۍ سندین تجربن ہندِ محل خانچ ڈیڈۍ آسان۔ امہ ڈیڈِ ہند پٲراو چھہ ضروری مگر اتھ پیٹھ گژھن نہ دلہِ ہنزِ جامع مشیدِ ہنزن ڈیڈین ہندۍ پاٹھۍ بورڈ کھسنۍ۔ مثلا "چھٹن میاں کی چوڑیاں!”

میہ چھیہ سیٹھا خوشی زِ یمن ژۅن شاعرن ہند ناو پیٹھہ کنہِ خالص مثال دنہ کہ غرضہ آو ، تم چھہِ پننہِ پننہِ شاعری پریتھ رنگہ وسعت دنہ چہ کوششہ منز اکھ اکھ قدم برونہہ پکان۔ میہ اوس شاعر بننک شوق مگر حالاتو دیت نہ ساتھ، میانۍ نظر چھیہ کاشرِ زبانۍ لول برن والین یمن شاعرن پیٹھ۔ یمن چھہ زبانۍ پیٹھ تہِ جان دسترس تہ تخیل تہِ وفور۔

میون یہ دوست، یمۍ سنزِ کہانی سیتۍ یہ پوسٹ شروع گوو، چھہ بہترین شاعری کران، یتھ منز تبسمے تبسم چھہ مگر یہ تبسم چھہ وۅنۍ اندۍ پکھۍ کس تمۍ سندس وسیع مشاہدس منز نون نیران۔

[خون جگر وول شعر چھہ ارشاد ملک سند]

کاغذ ودان آسن

sh

شوکت صوفی چھہ اکھ تازہ وارد یمۍ خاص طور نظم پننہِ اظہارک وسیلہ بناونک یرادہ کورمت چھہ تہ امیک ظاہر تہ بٲطن سرہ کھرہ کرنہ چہ کوششہِ منز لگتھ چھہ۔ عجیب کتھ چھیہ یہ زِ ییژ حوصلہ افزایی وۅتھہ ونس فن کارس درکار آسان چھیہ، تیژے چھیہ تمس تنقیدچ تہِ ضرورت۔ یم دۅشوے کامہِ اکی ساعتہ انجام دنہِ چھیہ دشوار تکیازِ پیٹھمس سوتھرس پیٹھ چھیہ یم کامہِ اکھ اکس مخالف۔ حالانکہ، اگر استعارہ چہ صورژ منز وچھو، نوو فنکار چھہ ادبچ نہالۍ یتھ حوصلہ افزایی تاپھ تہ تنقید سگ مہیا کران چھہ۔

شوکت صوفی یس چھیہ یمن دۅشونی چیزن ہنز ضرورت۔ مگر یپارۍ چھہ تنقید تہ تعریف دۅشوے سروگیمتۍ تہ فن کار دروگیومت۔ لہذا چھیہ امس پانے پننۍ وتھ بدِ کڈنۍ۔ یم کتھہ اوک طرف، فی الحال چھہ پیش امۍ سند اکھ تازہ غزل۔

غزل
شوکت صوفی

ژھاین نقاب ترٲوتھ گاشلۍ پکان آسن
واوس عجیب نیت صحرا وڈان آسن

باون اگرچہ گۅڈنیتھ خوابن بیہ دون تعبیر
تھاون حریر لٲگتھ پردن ژٹان آسن

شاید گژھاں چھہِ حاوی انہِ گٹۍ وۅں آفتابس
ژانگین ژہ رٲچھ کرۍ زے موکل یوان آسن

شہرس عجیب ژھۅپہ ہش دہہ چھس وۅتھان لیکن
چانین خراب حالن دل ونہِ دزان آسن

شامچ سہ زون تھاوی شاندس قریب ٲخر
ٲوج کتاب یتھ منز کاغذ ودان آسن

یہ غزل پٔرتھ چھہ احساس گژھان زِ شاعرس چھیہ امہ صنفہ ہندین لوازماتن پیٹھ نظر تہ سہ چھہ امہ چہ زبانۍ منز صوتی آہنگ قایم کٔرتھ ہیوکمت یُس غزلہ کہ خاطرہ اہم چھہ۔ وزن چھہ خوبصورتی سان ورتاونہ آمت، آوازن ہند دروبست تہِ چھہ متاثر کن۔ امہ وزنک آہنگ چھہ تفکراتی یُس غزلہ کس موڈس سیتۍ ہم آہنگ چھہ۔ غزلس منز چھہ نہ براہ راست معنوی نویر ۔ یعنی مضمون چھہِ تمے یم اکثر غزلن منز آسان چھہِ۔ مگر مضمون ادا کرنک یُس عام تعقلی طریقہ چھہ، تتھ برعکس چھہ شک گژھان زِ یمہ غزلک شاعر چھہ شعرن تہ مصرعن منز وۅپدن واجنین صرژن ہندس تاثراتی ماحولس زیادہ اہمیت دوان۔

بہ کورس "ٲوج کتاب” ترکیبہِ خاص طور متاثر۔ امہ تازہ ترکیبہِ سیتۍ چھہ شعر سیٹھا خیال آفرین بنیوومت، حالانکہ زونہِ سیتۍ "شامچ سۅ” فقرہ چھہ شعرس کنہِ حدس تام کمزور بناوان۔ غزلس منز چھیہ ژھاین نقاب تراونۍ، حریر لٲگتھ پردہ ژٹنۍ ہشہِ متاثر کن صرژہ اکھ نیک شگون۔

یمن پانژن شعرن منز چھہ صرف ڈۅڈ شعر تیتھ یتھ عام فہم پاٹھۍ فکرِ تروُن ونو۔ یہ ڈۅڈ شعر پچھانن چھہ نہ مشکل۔ شعر نمبر ژور پورہ پاٹھۍ تہ شعر نمبر تریہ اوڈ۔ باقی سٲری شعر چھہ معنیس یہ دپۍ زِ تہِ چلینج کران تہ پرن والس تفہیم بدلہ تخیل کس دنیاہس کن نوان۔ ذاتی طور چھس بہ یمہ کتھہِ ہند قایل زِ تخیلس تام واتناوتھ گژھہِ نہ شعر پوت کھوری ژلن بلکہ گژھہِ برونہہ کن پکنک آے رٹتھ تخیلس کامیاب پاٹھۍ کنہِ انسانی صورت حالس سیتۍ واٹھ دین۔ اگر یتھی ہوۍ تجربہ بارسس یِن، بے شک بنن تم غزلہ کہ موزونیت تہ مناسبتک جواز۔

کمۍ ژیہ ووننے عروض پر خالد

manzoor

چھکھ ژہ پھیران دربدر خالد
کمۍ ژیہ ووننے عروض پر خالد
چھُے نہ روزاں ژیہ یاد کالک سیُن
یاد تھاوکھ ژہ کیا بحر خالد
بحرِ منز بحرہ کیا یواں پھٹۍ پھٹۍ
زیٹھ کانہہ، کانہہ چھیہ مختصر خالد
فاعلاتن ـ مفاعلن ـ فعلن
بوزۍتھے چھُم یواں چکر خالد
رکن کیا گوو ہیجلۍ بناں کِتھہ کنۍ
پیش چھا زیر چھا زبر خالد
کم سخنور چھِہ اتہِ گمتۍ ہٲرتھ
اتِہ چھیہ ہیچھۍ ہیچھۍ تہِ بییہ کسر خالد
رومی ین تام وون عروضس پیٹھ
من نہ دانم ـ (میہ چھنہ خبر) خالد
بوز مشورہ ژہ گینگراوُن ہیچھ
وچھتہ شعرن گژھی سیزر خالد
یتھنہ باقی ژیہ کھوژھناوی کانہہ
شاعری چھے کرنۍ  تہ کر خالد

منظور خالد سند یہ غزل چھہ تمۍ سند تازہ غزل۔ یہ شاعر چھہ زیادہ تر عقیدتی شاعری کران تہ شاید شاعری کن بنیادی طور امی جذبہ کنۍ لوگمت۔ حالانکہ امہ کارہ خاطرہ چھیہ شاعری زیادہ موزون تہ نہ مناسب۔ منظور خالد اگر امی جذبہ کنۍ شاعری کن آو مگر وۅنۍ کیتس کالس روزِ پھرِ پھرِ اکاے کتھ ونان۔ امۍ سنزِ کتھہِ تہِ ہُرِ معنی تہ مطلب اگر یہ اتھ دۅہدشک معاملہ بناوِ نہ بلکہ ییہ وقفہ پتہ وقفہ یتھین شعرن منز تیتھ نویر ہیتھ زِ پرون گژھہِ مشتھ۔ عقیدتی شاعری منز تہِ اگر نہ نویر پیدہ کرنہ ییہ، یہ چھیہ تکراری تہ بورنگ شاعری بنان۔  اتھ شاعری منز چھہ خدشہ روزان زِ  شاعری بدلہ چھہ شاعری ہند مواد اہم بنان۔

پیٹھم غزل چھہ امۍ سنز اکھ کوشش تمہ موضوع منزہ نیبر نیرنچ۔ یہ غزل چھہ خود شاعری تہ امہ کس فنس متعلق شاعر سند ردعمل پیش کران۔ مخصوص موضوع کہ تکرارہ منزہ نیبر نیرنچ یہ کوشش گیہ میہ امۍ سندین یمن شعرن منز تہِ نظرِ، یم موضوعس تتھہ پاٹھۍ پیش کران چھہ زِ یمن منز چھہ جہات پیدہ گژھان۔

میلی نہ کہنی وچھ مہ تھدین پھریستہ کلین کن
گردن تہِ تھکی خطرہ چھے دستار پییی وسۍ

چھے قدرتن دیتمت ژیہ ہنر روز حدس منز
پننیو اتھو ینہ پانہ کانہہ شہکار پپی وسۍ

نِواں چُھم دل دہن شیرین تمۍ سُند
دُعاهن گوژھ میہ اکھ آمین تمۍ سُند

نظر ٹورے یہِ تس میانس کلس پیٹھ
خطا چھم یی پنن دستار دیتمس

میہ وچھمس اوش اچھن یس ووج ژیہ زونتھ
یہ کمۍ سند دود از للنوو شینن

شاعرس گژھہِ کامن سینس بدلہ سینس آف ہیومر آسن۔ سہ چیز چھہ خالد سندس کلامس منز کلہ کڈن ہیوان۔ لفظن تہ خیالن سیتۍ چھہ شاعر تمہِ ساعتہ گندان ییلہ تس منز خود اعتمادی پیدہ گمژ چھیہ آسان۔

مختلف موضوعن پیٹھ شعر وننہ سیتۍ چھہ نہ ایمان ڈلان۔ ضروری چھہ نہ زمینی تہ آسمانی عشقچی کتھ ییہ کرنہ۔ شاعری ہیکہِ کنہِ تہ چیزس پیٹھ سپدتھ۔ ہاکہ نلس پیٹھ تہِ تہ ہچوین چونچن پیٹھ تہِ، بشرطیکہ تتھ منز آسہِ پرن والۍ سندِ خاطرہ ذہنی تسکینک سامانہ۔ شفیع شوق سنز اکھ نظم چھیہ "ماگن”۔ تسنز بہترین نظم۔ نہ چھہ تتھ منز آسمانی عشق تہ نہ زمینی عشق۔ کانہہ تہِ نماز گزار شاعر اگر تژھ ہش نظم ونہِ، تس روزِ نہ ایمان راونک کانہہ خدشہ۔

منظور خالد چھہ عقیدتی شاعری علاوہ سماجی بدمعاشی ین شعرک موضوع بناوان۔ یہ ہن چھیہ جان مگر کوشش گژھہِ روزنۍ یہ گژھہِ نہ صرف موزون کلامی تام محدود روزن بلکہ گژھہِ امیک اظہار تخلیقی سطحس پیٹھ سپدُن، کم از کم زبانۍ ہندِ چالاک ورتاوہ تہ ذہانت سان۔  تخلیقی سطح نش چھہ میون مراد پیکر، تشبیہہ، استعارہ، اشاریت، تلمیح، بیترِ۔ رحمن راہی سند یہ قول چھہ ییتہ نس پھرُن لایق زِ ” فلسفیانہ بیان چھہ کنہِ ذہنی سرگرمی ہند انت تہ انجام آسان تہ توہ کنۍ حد بند سپدمت آسان۔ اتھ برعکس چھہِ ورتاونہ آمتۍ استعارہ تہ تشبیہہ یہ دپۍ زِ تہِ پانہ اکھ عمل، اکھ حرکت یتھ رنگہ رنگہ معنوی امکان نرِ آلوان باسان چھہِ۔”

منظور خالد چھہ مزاحیہ شعر تہِ لیکھان یمن ہند محرک تس اندۍ پکھۍ درینٹھۍ ینہ وول سماجی بدمعاشی ین ہند ماحول چھہ۔

منظور خالد چھہ فنی طور مستحکم شعر ونان، بس چھیہ موضوعن ہندِ تنوعچ ضرورت یۅس میہ چھیہ وۅمید سہ کرِ وارہ وارہ پورہ۔