کمۍ ژیہ ووننے عروض پر خالد

manzoor

چھکھ ژہ پھیران دربدر خالد
کمۍ ژیہ ووننے عروض پر خالد
چھُے نہ روزاں ژیہ یاد کالک سیُن
یاد تھاوکھ ژہ کیا بحر خالد
بحرِ منز بحرہ کیا یواں پھٹۍ پھٹۍ
زیٹھ کانہہ، کانہہ چھیہ مختصر خالد
فاعلاتن ـ مفاعلن ـ فعلن
بوزۍتھے چھُم یواں چکر خالد
رکن کیا گوو ہیجلۍ بناں کِتھہ کنۍ
پیش چھا زیر چھا زبر خالد
کم سخنور چھِہ اتہِ گمتۍ ہٲرتھ
اتِہ چھیہ ہیچھۍ ہیچھۍ تہِ بییہ کسر خالد
رومی ین تام وون عروضس پیٹھ
من نہ دانم ـ (میہ چھنہ خبر) خالد
بوز مشورہ ژہ گینگراوُن ہیچھ
وچھتہ شعرن گژھی سیزر خالد
یتھنہ باقی ژیہ کھوژھناوی کانہہ
شاعری چھے کرنۍ  تہ کر خالد

منظور خالد سند یہ غزل چھہ تمۍ سند تازہ غزل۔ یہ شاعر چھہ زیادہ تر عقیدتی شاعری کران تہ شاید شاعری کن بنیادی طور امی جذبہ کنۍ لوگمت۔ حالانکہ امہ کارہ خاطرہ چھیہ شاعری زیادہ موزون تہ نہ مناسب۔ منظور خالد اگر امی جذبہ کنۍ شاعری کن آو مگر وۅنۍ کیتس کالس روزِ پھرِ پھرِ اکاے کتھ ونان۔ امۍ سنزِ کتھہِ تہِ ہُرِ معنی تہ مطلب اگر یہ اتھ دۅہدشک معاملہ بناوِ نہ بلکہ ییہ وقفہ پتہ وقفہ یتھین شعرن منز تیتھ نویر ہیتھ زِ پرون گژھہِ مشتھ۔ عقیدتی شاعری منز تہِ اگر نہ نویر پیدہ کرنہ ییہ، یہ چھیہ تکراری تہ بورنگ شاعری بنان۔  اتھ شاعری منز چھہ خدشہ روزان زِ  شاعری بدلہ چھہ شاعری ہند مواد اہم بنان۔

پیٹھم غزل چھہ امۍ سنز اکھ کوشش تمہ موضوع منزہ نیبر نیرنچ۔ یہ غزل چھہ خود شاعری تہ امہ کس فنس متعلق شاعر سند ردعمل پیش کران۔ مخصوص موضوع کہ تکرارہ منزہ نیبر نیرنچ یہ کوشش گیہ میہ امۍ سندین یمن شعرن منز تہِ نظرِ، یم موضوعس تتھہ پاٹھۍ پیش کران چھہ زِ یمن منز چھہ جہات پیدہ گژھان۔

میلی نہ کہنی وچھ مہ تھدین پھریستہ کلین کن
گردن تہِ تھکی خطرہ چھے دستار پییی وسۍ

چھے قدرتن دیتمت ژیہ ہنر روز حدس منز
پننیو اتھو ینہ پانہ کانہہ شہکار پپی وسۍ

نِواں چُھم دل دہن شیرین تمۍ سُند
دُعاهن گوژھ میہ اکھ آمین تمۍ سُند

نظر ٹورے یہِ تس میانس کلس پیٹھ
خطا چھم یی پنن دستار دیتمس

میہ وچھمس اوش اچھن یس ووج ژیہ زونتھ
یہ کمۍ سند دود از للنوو شینن

شاعرس گژھہِ کامن سینس بدلہ سینس آف ہیومر آسن۔ سہ چیز چھہ خالد سندس کلامس منز کلہ کڈن ہیوان۔ لفظن تہ خیالن سیتۍ چھہ شاعر تمہِ ساعتہ گندان ییلہ تس منز خود اعتمادی پیدہ گمژ چھیہ آسان۔

مختلف موضوعن پیٹھ شعر وننہ سیتۍ چھہ نہ ایمان ڈلان۔ ضروری چھہ نہ زمینی تہ آسمانی عشقچی کتھ ییہ کرنہ۔ شاعری ہیکہِ کنہِ تہ چیزس پیٹھ سپدتھ۔ ہاکہ نلس پیٹھ تہِ تہ ہچوین چونچن پیٹھ تہِ، بشرطیکہ تتھ منز آسہِ پرن والۍ سندِ خاطرہ ذہنی تسکینک سامانہ۔ شفیع شوق سنز اکھ نظم چھیہ "ماگن”۔ تسنز بہترین نظم۔ نہ چھہ تتھ منز آسمانی عشق تہ نہ زمینی عشق۔ کانہہ تہِ نماز گزار شاعر اگر تژھ ہش نظم ونہِ، تس روزِ نہ ایمان راونک کانہہ خدشہ۔

منظور خالد چھہ عقیدتی شاعری علاوہ سماجی بدمعاشی ین شعرک موضوع بناوان۔ یہ ہن چھیہ جان مگر کوشش گژھہِ روزنۍ یہ گژھہِ نہ صرف موزون کلامی تام محدود روزن بلکہ گژھہِ امیک اظہار تخلیقی سطحس پیٹھ سپدُن، کم از کم زبانۍ ہندِ چالاک ورتاوہ تہ ذہانت سان۔  تخلیقی سطح نش چھہ میون مراد پیکر، تشبیہہ، استعارہ، اشاریت، تلمیح، بیترِ۔ رحمن راہی سند یہ قول چھہ ییتہ نس پھرُن لایق زِ ” فلسفیانہ بیان چھہ کنہِ ذہنی سرگرمی ہند انت تہ انجام آسان تہ توہ کنۍ حد بند سپدمت آسان۔ اتھ برعکس چھہِ ورتاونہ آمتۍ استعارہ تہ تشبیہہ یہ دپۍ زِ تہِ پانہ اکھ عمل، اکھ حرکت یتھ رنگہ رنگہ معنوی امکان نرِ آلوان باسان چھہِ۔”

منظور خالد چھہ مزاحیہ شعر تہِ لیکھان یمن ہند محرک تس اندۍ پکھۍ درینٹھۍ ینہ وول سماجی بدمعاشی ین ہند ماحول چھہ۔

منظور خالد چھہ فنی طور مستحکم شعر ونان، بس چھیہ موضوعن ہندِ تنوعچ ضرورت یۅس میہ چھیہ وۅمید سہ کرِ وارہ وارہ پورہ۔

غلام نبی آتش سنز کتاب بازیافت

bazyaaft

از شامنس پٔرم غلام نبی آتش سنز کتاب "بازیافت” یتھ منز کینژن پرانین شاعرن پیٹھ تحقیقی مقالہ چھہِ تہ تہندِ کلامک نمونہ چھہ۔ یمن منز چھہِ کینہہ راوۍ متۍ گونماتھ۔ اکثر چھیہ میہ کاشرین کتابن منز صفحہ پتہ صفحہ غلطی میلان۔ یتھ کتابہِ چھہ جان پاٹھۍ پروف پرنہ آمت۔ صرف چھہ کنہِ کنہِ کانہہ کانہہ لفظ شعرن منز غلط چھپیومت۔

کتابہِ منز چھہ عرفی شیرازی سند اکھ شعر یتھہ پاٹھۍ دنہ آمت:

در خونِ جگر عرفی غلط رومی رقصد
در آتشِ خود سوزد پیمانہ چنیں باید

یہ شعر تہِ چھہ بے معنہ تہ بے وزن۔ اصل شعر چھہ:

در خون جگر عرفی غلتد و می سوزد
درآتشِ خود رقصد پروانہ چنیں باید

کتہِ کور چھہ شعر واتناونہ آمت۔ مگر یژھہ غلطی چھیہ اتھ کتابہِ منز نہ آسنس برابر۔ کلیات مہجور چھہ اتھ مقابلہ غلطی ین ہند شرمناک پلندہ۔ تتھ برونہہ کنہِ چھیہ آتش صٲبنۍ کتاب سۅن۔ میہ آیہ اتھ کتابہِ منز پیش کرنہ آمتس کلامس منز تژھہ مثالہ اتھۍ یم میانین کینژن خیالن پشتی کران چھیہ۔ تمہ کنۍ آو کتاب پرنس مزہ۔

اکثر چھہِ یہ شکایت اسۍ بوزان زِ سانین پرانین شاعرن چھہ فارسی عروضس پیٹھ وننہ آمت کلام پھٹان۔ غلام نبی آتش سندین یمن مقالن منز چھہِ تتھۍ شاعر تہِ شامل یمن ہند کلام حیرانگی ہندس حدس تام اکس جایہ تہِ پھٹان چھہ نہ۔ اگر کنہِ جایہ پھٹ سہ چھہ ٹاکارہ پاٹھۍ بیاضن ہندِ نقل تہ زبانۍ روایت چہ کمزوری کنۍ۔ مثلا:

جلال پیرو سیاہی چھاو
سیاہ باغس بر مژراو

جلال الدین نہار (جلال شاہ) چھہ اکثر مقطعن منز پانس "جلہ پیر” ناوہ مخاطب کران۔ اتھ بٲتس منز تہِ چھہ جلہ پیرے مگر کلام پھِرن والیو بنووس جلال پیر۔ امس شاعر سند یوتاہ کلام پیش چھہ کرنہ آمت، تتھ منز چھہ صرف اتھۍ اکس جایہ وزن پھٹان یمہ کنۍ یہ غلطی ٹاکارہ چھیہ۔ اصل شعر چھہ:

جلہ پیرو سیاہی چھاو
سیہ باغس ژہ بر مژراو

یتھے پاٹھۍ چھہ بیاکھ شعر:

جلال پیرو أنس ہاوُن چھہ سر نا محرمس باوُن
چھہ بہتر پان مشراوُن سہ گوو اقرارِ یار اے دل

اتھ شعرس منز چھہ "جلال پیرو” وزنہ نیبر۔ اصل مصرعہ گژھہِ آسن:

جلہ پیرو أنس ہاوُن چھہ سر نا محرمس باوُن

بہ چھس یہ لگاتار ونان زِ پرانین شاعرن ہندس فارسی وزنن پیٹھ وننہ آمتس کلامس چھیہ تقطیع کرنہ بجایہ مطالعہ کرنک ضرورت تہ ورتاوکۍ اصول دریافت کرنچ ضرورت۔ میہ چھیہ اتھ سلسلس منز کٲم کرمژ۔ بازیافت کتابہِ کرِ میہ مزید کینہہ مثالہ دستیاب۔

غلام نبی آتش زندہ باد!

نہج رسالہ، اکھ سوال؟

نہج رسالہ کہ اجرا سیتۍ چھہِ کینہہ سوال ذہنس منز وۅتھان۔ یمہ ساعتہ میہ نیب شروع کور میہ برونہہ کنہِ ٲسۍ کینہہ اہم مسلہ یمن پیٹھ بہ امہ کہ ذریعہ کتھ کٔرتھ ڈایلاگچ دعوت دنۍ یژھان اوسس۔

املاہک مسلہ اوس اکھ۔ اتھ کٔر میہ نیبس منز عملی شکل دنچ کوشش۔

عروضک مسلہ اوس بیاکھ یتھ متعلق اکھ کنفیوژن کھڑا کرنہ اوس آمت۔ میہ دژ اتھ روایتی تہ خشک موضوعس نیبس منز واریاہ جاے، شاید ضرورت کھوتہ زیادہ۔ عروضس متعلق کرۍ میہ روایتی تصوراتن سیتۍ سیتۍ لسانیاتی وچھن کونہ کنۍ تہِ تم نکتہ پیش یمن نہ سانۍ ادیب واقف تہِ ٲسۍ۔ زیادہ تر ادیبن گوو سہ سورے کلہ پیٹھۍ۔

سانین نوین ادیبن برونہہ کنہِ نثرکۍ یم نمونہ ٲسۍ تہ یم کاشرِ شعبہ کہ طرفہ بڑھ چڑھ کر پروناونہ یوان ٲسۍ تمن ہندِ جادِ منزہ نوۍ ادیب کڈنہ خاطرہ انہِ میہ تمن ہنزہ کمزوری تہ خامی برونہہ کن تہ تتھ اسلوبس دژ میہ تنقید کہ خاطرہ زیادہ اہمیت یُس زیادہ موزون تہ مناسب اوس تہ کُنہِ نتہ کُنہِ بہانہ کاشر شعبہ کس تدریسس منز رد کرنہ یوان اوس۔

میہ کٔر کوشش زِ نو ۍ ادیب انوکھ برونہہ کن، یتھ منز زیادہ کامیابی سپز نہ مگر خاطر خواہ پیش رفت سپز۔

غرض نیب کہ خاطرہ اوس میہ ذہنس منز اکھ پروگرام، یہ اوس نہ نظمن تہ غزلن ہند خالص اکھ مجموعہ۔

یوت تام نہ نہج رسالہ کانہہ مخصوص نکتہ نظر برونہہ کن انہِ اتھ تہ مثلا شیرازس منز روزِ نہ کانہہ فرق۔ گۅڈنکۍ زہ شمارہ وچھتھ چھہ حوصلہ تہِ ہران تہ مایوسی سپدان۔ حوصلچ تہ خوشی ہنز کتھ چھیہ زِ واریاہن نوین لیکھن والین چھیہ جاے دنہ آمژ، مایوسی چھیہ یہ زِ امین کاملس تہ رحمن راہی یس پیٹھ شایع شدہ مضمون تہ غلام نبی فراقنۍ مطبوعہ شاعری چھیہ صرف یہ ہاونہ خاطرہ شامل کرنہ آمژ زِ نہج چھہ نہ کنہِ گروپس سیتۍ منسلک۔ ییژ کیا مجبوری ٲس امہ اعلانچ زِ گۅڈے شایع شدہ چیز آیہ شامل کرنہ۔ یہ صفایی کمس چھیہ پیش کرنہ آمژ؟ یہ صفایی چھا ٹینگس تہ راہی یس پیش کرنہ آمژ؟ نیبک یس رویہ ٹینگس تہ راہی یس متعلق چھہ، نہج ما آو دراصل سہ زایل کرنہ خاطرہ کڈنہ؟ کامل تہ راہی یس پیٹھ گۅڈنکۍ سے شمارس منز مضمون شامل کٔرتھ ما چھہ نہج اکھ خود تردیدی سٹیٹمنٹ پیش کران؟ نہج ما چھہ یہندۍ سے دفاعس یا وننس پیٹھ کڈنہ آمت؟

اگر نہج ٹینگ، راہی، مرغوب بیترِ ادیبن ہندۍ نگارشات تہ یمن متعلق شایع شدہ مضمون یا گۅڈے معلوم کتھن ہند پروپیگندا شایع کرنہ خاطرہ کڈنہ آو، تیلہ چھیہ نہ امچ ونکیس صحیح طور کانہہ ریلونس تکیازِ مۅردن چھہ نہ زو اژان۔ کامل یا راہی یا ٹینگ کیا لیکھن وۅنۍ تیتھ یہ تمن وننے رودمت چھہ؟ یمن یہ ونن اوس تہِ چھہ یمو وونمت، وۅنۍ چھیہ بس اداکاری یۅس یم سٹیجن پیٹھ کھستھ کران چھہِ۔ یمن ہنز چھیہ نہ ونۍ کین کانہہ ریلونس۔ بہ ونہ رفیق رازس تام یہ ونن اوس تہِ چھہ تمۍ تہِ گۅڈے وونمت تہ بھرپور اندازس منز وونمت۔ ییتہ یور کیا گژھہِ آسن یمہ کنۍ اکھ نوو رفیق راز برونہہ کن ییہ۔ یہ گوو رفیق راز یُس ونہِ تخیلی طور سرگرم چھہ، تا بحال چھیہ نہ کامل یا راہی یا ٹینگ سنز کتھے۔

نہج رسالک مرکز گژھہِ نوو ادیب آسن۔ نوین ادیبن گژھہِ یہ نکتہ فکرِ ترُن زِ یوت تام نہ اسۍ پننین پیش رون نش انحراف کرو، ادب ہیکہِ نہ برونہہ پکتھ۔ ییلہ پیش رو ییتیاہ بڈۍ بنن زِ تم بنن نوین ادیبن ہندِ خاطرہ اکھ نفسیاتی ٹھور اکھ ناقابل عبور معیار، زانن گژھہِ انحراف چھہ ضروری۔ ییتہ نیو ٹی ایس الیٹ تس پتہ ینہ والیو شاعرو رد کٔرتھ، اقبال فہیمنۍ پاٹھۍ وونکھ نہ الیٹ سنز شاعری چھیہ نہ شاعری بلکہ وونکھ سۅ چھیہ نہ سۅ شاعری یۅس تم لیکھنۍ یژھان چھہِ۔ تمو بدلوو پننہ خاطرہ شاعری ہند رۅخے۔ الیٹ سند آبجیکٹیو کورلیٹیو آو سیودے رد کرنہ، شاعرو لٲج ذاتی شاعری کرنۍ۔ پرانہ جنریشنہ ہنز چھتر چھایا منز چھہ نہ ادب تخلیق کرنہ یوان۔ پرانین تھپھ کرتھ چھہِ تمے پکان یمن پانس کوٹھۍ آسن نہ۔

اگر یمن سانین بزرگ ادیبن متعلق مطالعہ پیش ین کرنہ، سۅ روزِ مردہ زندہ کرنہ کھوتہ زیادہ بہتر کٲم۔ تمن مطالعن منز وچھو اسۍ زِ یم کتھہ پاٹھۍ چھہِ سانہِ خاطرہ رلیونٹ۔ مگر تتھ منز تہِ گژھۍ ژھری عقیدت تہ لحاظ تہ ادب (مطلب عزت) بدلہ ادبی معیار پیش نظر روزنۍ۔

حیات عامر حسینی سنز شاعری

کانہہ تہِ بٔڈ شاعری ہیکہِ نہ روحانی یا فکری تصوراتن تہ خیالاتن نیبر سپدتھ۔ خالص خوبصورت لفظ، آہنگ تہ خود امکانی معنی یودوے ازۍ چہ شاعری ہند بوڈ حصہ چھہِ تہ لوکن ہندین دلن تہ دماغن برابر رنزناوان چھہِ، مگر یم چھہِ نہ اتھ ادبی کارگزاری کانہہ وسیع تہ سرون معنی عطا کٔرتھ ہیکان۔ اتھ شاعری پتہ کنہِ چھہ نہ زندگی متعلق شاعر سند  پنن سوچ کارفرما۔ یہ شاعری چھیہ زیادہ تر زبانۍ تہ معنی کہ ورتاوہ کہ حوالہ اتفاقی تہ ایکسیڈنٹل۔ اتھ منز چھہِ شاعر سندیو فکری تہ عملی تجرباتو بدلہ زیادہ تر لسانی سیاقس منز سپدن والۍ خودکار تجربہ درینٹھۍ گژھان۔ یہ شاعری چھیہ واریاہن مثالن منز شعری فارمہ ہندِ ورتاو چ کرتب بازی بنان۔ حیات عامر حسینی چھہ نہ امہ قسمہ چہ شاعری منز دلچسپی تھاوان۔ یہ شاعری ہیکہ نہ کانہہ ٹیگور، اقبال یا الیٹ پیدہ کٔرتھ۔

حیات عامر سنز شاعری چھیہ امہ لحاظہ ایمبیشس تہ تمن شاعرن منز شامل گژھنچ کوشش کران یم شاعری اکھ اہم مفکری کارگزاری تصور کران چھہ‏۔تسنز شاعری چھیہ اکی آنہ انسانی تواریخ تہ وجودی مسلن کۅم کرنچ کوشش کران۔ تسننرِ شاعری منز چھہِ زمان و مکانکۍ تصورات جایہ جایہ اظہار لبان۔ سہ چھہ مقامی صورت حالس تہِ اکس وسیع انسانی تواریخی پوت منظر کس گاشس منز وچھنک قایل۔ تسنز شاعری چھیہ انسانہ سندِ روحانی شناختچ تلاش۔

حیات چھہ نہ مختصر لریکل شاعری ہند زیادہ قایل، تسنز نظم چھیہ ایمبشس آسنہ کنۍ زیچھرس کن لمان۔ یہ چھہ اکھ سفر تہ اتھ زیچھہِ وتہِ قاری یس پانس سیتۍ پکناونہ خاطرہ چھہ سہ شعر کین ظاہری گۅنن یعنی آہنگس تہ امیجری تہِ سیٹھا کٲم ہیوان۔ یہ امیجری چھیہ رلہ ملہ مقامی تہِ تہ آفاقی تہِ۔ اتھ منز چھیہ کشیر تہِ تہ عرب وعجم تہِ، یہ چھیہ کایل تہِ تہ اکایل تہِ۔امہ کس آہنگس منز چھہ تواریخ کین پڈرین ہند گرز تہ وقتہ چین کۅلن ہنز روانی تہِ۔  حیات نین نظمن منز چھہِ خیروشر،  کاز اینڈ ایفیکٹ، سوال وجواب، مسلہ تہ حل بیک آن موجود۔ سہ چھہ پننہ نظمہِ ہندِ خاطرہ اکس مانوس ماحولس منز  وسیع علامتی شناخت پیدہ کرنچ کوشش کران۔

کمۍ تام چھہ انگریزی ادبس منز وونمت زِ بٔڈۍ شاعر چھہِ "کیا” ونان تہ لۅکٹۍ شاعر چھہِ "کتھہ پاٹھۍ” ونان۔ مگر حقیقت چھیہ یہ زِ اتھ "کیا”ہس تام واتنچ وتھ چھیہ یۅہے "کتھہ پاٹھۍ”۔ حیات عامر چھہ یۅہے” کیا” وول شاعر تہ یوت یوت یہ اتھ "کتھہ پاٹھۍ” یس کامہِ لاگہ، دویمین لفظن منز یوت یوت یہ موادس نظمہِ ہنزِ ہیژ تہ زبانۍ سیتۍ  کن ہیکہِ کٔرتھ، تیوت کن زِ مواد ییہ نہ الگ پاٹھۍ بوزنہ، تیوت روزن امۍ سنزہ نظمہ کامیاب تہ میہ چھہ پورہ یقین زِ کاشرِ معاصر شاعری منز کرن اکھ نوو تہ قابل قدر اضافہ۔

سند اننچ روایت

یہ ٲس اکھ روایت تمہ زمانچ ییلہ عام انسان پننہِ تقدیرک پانہ مٲلک اوس نہ۔ کیا دینی، کیا علمی، کیا مالی، تمام معاملن منز اوس سماجہ کین کینژن فردن پتہ پتہ پکان۔ یہ اوس محتاج انسان۔ دینی معاملن منز اوس عام انسانہ سند گۅناہ ثواب مذہبی رہنماہن (یمن اسۍ از ملہ ونان چھہِ) مٹہِ تکیازِ عام انسانس نہ ٲس تعلیم تہ نہ سۅد بۅد ۔ ماخذن تام تہ ٲسکھ نہ دسترس۔ کانہہ تہ معاملہ آسہِ ہے کیا چھ ٹھیک کیا غلط تہِ پتاہ کرنہِ ٲسۍ کنی ٹکھ مذہبی رہنماہن نش نوان۔ تمے ٲسکھ وتہ ہاوک بنان۔ یۅہے حال اوس علمک۔ علم تہِ ما اوس عام۔ خواندگی ٲس نہ عام تہ علم کپارۍ آسہِ ہے عام، بییہ ٲس نہ تم ذریعہ تہ یم ازکۍ کس انسانس دستیاب چھہِ۔ صرف ٲسۍ کینہہ شخص آسان یمن عٲلم ناو پیوٚو۔ یمنے نش اوس عام انسان ژاٹہ کوٚٹ کٔرتھ بیہان۔ سیاسی معاملن منز اوس بادشاہ صٲب  یا تسند نایب عام انسانس پیٹھ راجا تاجا کرنہِ بیہان۔ پانے۔ پننی مرضی۔ بادشا اوس خدایہ سند نایب ماننہ یوان۔ مالی حالت ٲس یہ ز کینزنے شخژن نس اوس مال، ملیکت تہ دولت۔ یمے ٲسۍ عام انسانن بیگارِ لاگان۔ یہ اوس اکھ دنیا یس یتھے پاٹھۍ چلان اوس۔ انسانی تمدنک اکھ  مرحلہ۔ اتھ دنیاہس منز ٲس لازما شخص پرستی۔ واریاہن کلچرن منز چھیہ نہ یہ شخص پرستی ونہِ تھپھ تلان۔

ازکۍ کس زمانس منز چھہ پریتھ فرد پننہِ تقدیرک پانہ مٲلک۔ تکیازِ ازچھیہ تعلیم عام، خواندگی تہ ماخذن تام چھیہ عام انسانہ سنز دسترس۔ پرانین ہنز سند اننچ روایت ٲس پرانۍ سے دنیا ہس منز شوبان تہ معنی تھاوان۔ ییلہ تعلیم عام گژھان چھیہ سندِ ہنز جاے چھیہ دلیل رٹان۔ سند اننۍ ٲس پرانہِ دنیاہچ مجبوری، ازچ حقیقت چھیہ دلیل، یتھ استدلال تہِ ونان چھہِ۔ مچھہِ پیٹھ مچھ مارنۍ اوس پرانہِ دنیاہک وطیرہ۔ اتھۍ دنیا ہس منز ٲسۍ لوکھ زبانۍ ہندین معاملن منز، لفظہ کس استعمالس تہ باقی معاملن منز پرانین شاعرن ہنز سند پیش کران تکیازِ تہندۍ شعر ٲسکھ جٹ پٹ یاد آسان۔ کتابہ ما آسہ لوکن نشہِ، ڈکشنری ما آسہ۔ ساروے کھوتہ بٔڈ ریفرنس ٲس لوکن ہندس یاداشتس منز پرانین ہندۍ شعر۔ ہتن نفرن ہنز دلیل ٲس اکس شاعر سنزِ سندِبرونہہ کنہِ لٲر ہش پتھر پیوان۔

اگر پرانۍ تہِ سندے یاژہ ژھانڈان آسہن نویر کپارۍ ییہِ ہے، نوۍ استعمال کپارۍ گژھہن عام۔ تمن ٲس گاہے گاہے پننہ مجبوری منزہ نیرتھ بغاوت کرنۍ پیوان۔

کاشرس کلاسیکل زبانی ہند درجہ دنک مطالبہ — ہتھ کرور روپین ہند سوال!

لسانیات کہ علمہ مطابق چھہ نہ کلاسیکل زبانۍ ہندس تصورس کانہہ معنی۔ لہذا چھہ امیک تعریف غیر لسانیاتی بنیادن پیٹھ قایم۔ زبانۍ سیتۍ کلاسیکل لفظ جوڑتھ چھہِ قدیم، ادبہ کہ لحاظہ باگہِ برژ، تہ شاید ورتاوس منز نہ آسنکۍ خیال ذہنس منز یوان۔ برٹش راجس دوران ییلہ تہندِ دسۍ قدیم یونانۍ تہ لاطینی زبانن ہندۍ پاٹھۍ سنسکرت تہِ کلاسیکل قرار دنہ آیہ، مغل دربارن کرۍ تم ہندوستانس منز فارسی تہ عربی تہِ کلاسیکل قرار دنہ خاطرہ مجبور۔ یورپس منز اوس کلاسیکل زبانۍ ہند تصور اکھ «مردہ» زبان یۅس تواریخی طور انسانی ارتقاہس منز اہم آسہِ روزمژ۔ مگر مغلن ہندِ دسۍ ژایہ اتھ منز سیاست، امہ کنۍ نہ زِ عربی تہ فارسی کیا چھیہ نہ انسانی ارتقاہس منز اہم، بلکہ امہ مۅکھہ زِ یم دۅشوے زبانہ آسہ زندہ جاوید، متواتر تہ مسلسل۔ازۍ کس سیاقس منز تہِ چھہ کینژن زبانن کلاسیکل زبانۍ ہند درجہ دنک سلسلہ کانگریس سرکارچ سیاسی کھیل۔ تامل ٲسۍ اکثر امیک یہ تصور ہیتھ مطالبہ کران زِ یہ چھیہ سنسکرتس تہِ پرانۍ زبان تہ یو پی اے 1 سرکار ینس سیتی آو 2004 منز اتھ کلاسیکل زبانۍ ہند درجہ دنہ۔ ینہ شمالی ہندوسستانس منز شور وۅتھہِ، دویمی وریہ (2006) منز آو سنسکرتس تہِ یہ درجہ دنہ۔ شاید اوس نہ اتھ سرکارس یہ اندازہ زِ یہ مطالبہ کرن اکہِ اکہِ ساریۍ زبانہ۔ جنوبی ہندوستانس منز تج باقی ریاستو پننہ پننہ زبانۍ ہندِ خاطرہ کلاسیکل زبانۍ ہندِ درجہ کہ مطالبچ علم۔ نتیجہ یہ زِ جنوبی ہندوستان چین ژۅشونی بجن زبانن تلیگو، کنڈ (2008) تہ ملیالم (2013) آو کلاسیکل زبانۍ ہند درجہ دنہ۔ زبانن متعلق اتھ سیاسی مطالبس منز گیہ باقی زبانہ تہِ شامل۔ بنگالۍ، گجراتۍ، اوڈیہ بیترِ تہ وۅنۍ کاشر۔ 

ملیالم کہ تعلقہ ییلہ سوال ووتھ زِ ٲخر کلاسیکل زبان کتھ ونو، ہندوستانکۍ منسٹری آو کلچرن دیت جواب زِ امہ زبانۍ ہنز تحریری تواریخگژھہِ ڈۅڈ ساس، زہ ساس وری پرانۍ آسنۍ، امچ ادبی روایت گژھہِ واریاہ قدیم تہ تحریری آسنۍ، امچ ادبی روایت گژھہِ نہ مستعار آسنۍ بلکہ اوریجنل، تہ کلاسیکل زبان تہ ادب گژھن ازۍ کہ جدید ادبہ نش مختلف آسنۍ بلکہ گژھہِ یمن درمیان اکھ ژھین آسن۔

ملیالم زبان یۅس شاید کاشرِ چی وٲنسہِ چھیہ تہِ آیہ یمن معیارن پیٹھ وتراونہ۔ امہ زبانۍ ہندیو عالمو ژھٲنڈۍ ملیالم لفظ پرانین مسودن منز یتھہ پاٹھۍ اسۍ راج ترنگنی منز کاشرۍ لفظ ژھٲنڈتھ کاشرِ زبانۍ ہنز قدامت ثابت کران چھہِ۔ سوال چھہ ٲخر گژھہِ کیا حاصل کلاسیکل زبانۍ ہندِ درجہ سیتۍ؟ مرکزی سرکار کہ طرفہ رۅپیہ۔ رۅپیہ بلاے!

فروری 2013 منز دیت مدر لینگویج ڈے یس پیٹھ سانۍ دوست مجروح رشیدن بیان زِ مرکزی سرکار کہ طرفہ گرانٹ ترنہ سیتۍ واتہِ سانہِ زبانۍ واریاہ فایدہ، مختلف اصنافن، ترجمہ کاری تہ تحقیقس لگہِ پوچھر۔ کلاسیکل زبانۍ ہندس تقاضس منز شامل اکثر ادیبن چھیہ نہ خبرے زِ کلاسیکل زبانن کمہِ مۅکھہ چھہ گرانٹ دنہ یوان۔ مجروح چھہ پننہ سادگی منز شاید میانۍ پاٹھۍ سوچان اگرے سرکار گرانٹ دیہِ، سہ گژھہِ زبانۍ ہنزِ موجودہ ترقی ہندِ خاطرہ آسن۔ اگر تژھ کتھ آسہِ ہے تیلہ ما پزِ ہے تامل ہشہِ ترقی یافتہ، بجہ تہ عالمس منز متعارف زبانۍ دنہ یُن۔ سۅ کیا پتھ گمژ زبان ٲسا؟ کٲژا زبانہ ہے تریشہ پیمژہ چھیہ، تمن کونہ دیتکھ کانہہ گرانٹ؟
کلاسیکل زبانن چھہ (ازکل 100 کرور) یہندس پتھ کالس پیٹھ تحقیق کرنہ خاطرہ دنہ یوان۔ یعنی قبرو منزہ مۅردہ واپس کڈنہ خاطرہ۔ تمہِ سیتۍ کیا نیرِ؟ امہ خاطرہ چھہ منسٹری آف کلچرن سینٹر آف ایکسلینس ان کلاسیکل لینگویجز ناوہ اکھ ادارہ بنوومت، یونیورسٹی ین منز چھہِ شعبہ تہ چیرہ بناونہ یوان۔ غرض پروجیکٹ ہا یمن پیٹھ رقم خرچ کرنہ یوان چھہِ۔ مگر کیا پزۍ پاٹھۍ چھا امہ قسمچ کانہہ کٲم سپدان؟ اسہِ چھہِ کشمیر یونیورسٹی منز کاشرِ ادبہ، زبانۍ تہ کلچر کہ تعلقہ شعبہ ژۅمبرہ قایم، تمو کُس تۅرہ کور ( امہ ورٲے زِ کینژن شخصن بنییہ نوکری) زِ وۅنۍ کرن کلاسیکل زبانۍ ہنزِ ترقی ہندۍ ادارہ تہ پروجیکٹ۔ آندھرا پردیشس منز آو تلیگو زبانۍ ہند قبل مسیح خطس تہ مسودن پیٹھ کٲم کرنہ خاطرہ کرور بود رۅپین ہند پروجیکٹ پیش کرنہ۔ پتہ کیا کور تمو ونیک تام؟ تم عالمے کتہِ رودۍ یم امہ قسمہ کین مطالعن پیٹھ کٲم کٔرتھ ہیکن یا کرنٲوتھ ہیکن! کلاسیکل کنڈ زبانۍ ہندس سکالر ٹی وی وینکٹا چالا شاستری یس پتہ کُس اکھا چھہ یمس امہ زبانۍ ہند تیوت تواریخی علم چھہ؟ یۅہے حال چھہ یمن سارنے بجن زبانن ہند۔ اکہ بجہ امریکی یونیورسٹی کٔر وری وادن کوشش تلیگو زبانۍ ہند اکھ پروفیسر ژھانڈنہ خاطرہ یُس امہ زبانۍ ہندِ ادبک ننایا دورہ پیٹھہ ازتام کہ ادبک عالم آسہِ۔ دعوا دار ٲسۍ سیٹھا مگر اکھ تہِ اوس نہ لایق کار۔

کلاسیکل کاشرس پیٹھ کُس کرِ کٲم؟ کژتام بٹہ ٲسۍ تم تہِ مۅکلیہ۔ کشیرِ منز کُس چھہ سنسکرت زانان؟ سہ کس تگہِ شاردا پرُن؟ اتہِ چھہ نہ لوکن ہندی پرُن تگان۔ ہندی کیا وۅنۍ چھہ نہ اسہِ فارسی تہِ وۅتھان۔ پتھ کیا ہش کٲم سپدِ کلاسیکل کاشرس پیٹھ؟ ییتہ اوس اختر محی الدین راج ترنگنی منز آمتین جایہ ناون پیٹھ تبصرہ کران، سہ تہِ انگریزی ترجمہ پٔرتھ۔ یورپی عالمو یۅس کٲم کاشرس پیٹھ کٔرمژ چھیہ ، اسۍ چھہِ ونہِ سۅے پھران، تمہ علاوہ نہ کہنی۔ بوڈ بڈیم ییہ کلاسیکل زبانۍ ہندِ ناوہ ینہ وول پونسہ مشاعرن پیٹھ، محفل موسیقی ین پیٹھ تہ نمایشن پیٹھ خرچ کرنہ۔ تمہ علاوہ کیا زن ہیکو اسۍ کٔرتھ۔ نصفہ کھوتہ زیادہ رقم نن کشیرِ نیبرم پنڈت ساہتیہ اکادمی تہ سنٹرل انسٹی چیوٹ آف میسور کہ ذریعہ وڈٲوتھ تکیازِ تمن زیادہ چھہ نہ کانہہ کلاسیکل زبانۍ ہند دعویدار۔ تمہ پتہ تمن منز تہِ کُس چھہ رودمت یس اسۍ عالم ؤنتھ ہیکو۔ تم چھہِ لل دیدِ تہ شیخ العام سندِ پیٹھہ وۅٹھ تلِتھ پرمانند، زندہ کول تہ دیناناتھ نادمس تام وٲتتھ کس تام تکو صٲبس پیٹھ تھکھ کڈان۔ کاشریو ادیبو تہ زبان دانو کم ریسرچ پییپر چھہِ وچھمتۍ۔ سانہِ ثقافتک بوڈ ترجمان محمد یوسف ٹینگ چھہ تنقید تہ تحقیق بدلہ انشاییہ لیکھان تہ امی انشاییہ کہ برکتہ بنیوو سہ بوڈ عالم۔ بیاکھ عالم چھہ اورچہ یورچہ کتابہ تلِتھ ییتۍ نے سیدیس تتۍ نے ترجمہ کران۔ امی ترجمہ کاری بنوو سہ سون بوڈ بارہ نقاد۔ یمو پتہ کُس اکھا چھہ یُس یہ تہِ ہیکہِ کٔرتھ یہ یمو کور؟

کلاسیکل زبانۍ ہندس درجس سیتۍ چھہِ زہ بڈۍ بین الاقوامی ایوارڈ وابستہ یم یمن زبانن منز عالمن سالانہ دنہ یوان چھہِ۔ اکھ نی تن ٹینگ تہ بیاکھ راہی۔ آیہ تہ گیہ کتھ۔ مگر یمہ خیالہ چھس بہ تہِ خۅش زِ کلاسیکل زبانۍ ہندس درجس سیتۍ ییہ کلاسیکل زبانۍ ہندِ تحقیق خاطرہ اکھ ہتھ کرور رۅپیہ کشیرِ اندر۔ چلو اصل کامہِ پیٹھ نہ سہی، کنہِ نتہ کنہِ چیزس پیٹھ ین خرچاونہ۔ کاشرِ زبانۍ نہ سہی، کٲنسہِ نتہ کٲنسہِ واتہِ فایدہ۔

odia

اوڈیہ زبانی کلاسیکل زبانی ہند درجہ دنہ کہ مطالبک لوگو۔

کاشرِ ڈکشنری ہند ریپرنٹ

بوزم اکاڈمی چھیہ کاشرِ ڈکشنری ہند ریپرنٹ چھاپنک فیصلہ کورمت۔ اگر یہ پوز چھہ امہ کھوتہ بڈ ہیکہِ نہ کانہہ بیوقوفی ٲستھ۔ میہ گژھہِ معافی دنۍ بہ چھس ہمیشہ غلط لفظ ورتاوان۔ مگر یہ ڈکشنری چھیہ حقیقتا اکس غلط بنیادس پیٹھ کھڑا کرنہ آمژ۔ اتھ چھیہ نظرثانی کرنچ ضرورت تہ امیک ترتیب چھہ خاص کر درست کرنک ضرورت۔ یم لفظ پیمتۍ چھہ تم ہرراونک چھہ ضرورت، یم غلطی ہا اتھ منز چھیہ تم درست کرنک چھہ ضرورت، لفظن ہندۍ غلط معنی درست کرنک چھہ ضرورت۔ امیک املا چھہ درست کرنک ضرورت تکیازِ یُس املا اتھ منز ورتاونہ آمت چھہ، سہ چھیی نہ وۅنۍ ورتاونہ یوان۔  

dim

امین کامل سندِ اتھہ ڈکشنری ہندس صفحس پیٹھ کینہہ نوٹ۔

اکادمی کتاب گھر۔۔ کینہہ سفارشہ

بہ چھس جموں کشمیر اکاڈمی آف آرٹ کلچر اینڈ لینگویجز کس حالیہ فیصلس خیر مقدم کران یمہ مطابق امہ ادارہ کس کتاب گھرس منز تمام علاقایی زبانن ہندین ادیبن ہنزہ کتابہ ناوہ خاطرہ کمیشنس پیٹھ کننہ ین۔ میہ اوس امہ خاطرہ سیکریٹری اکادمی خالد بشیر صابس سیتۍ رابطہ کورمت۔ وۅمید چھیہ اتھ فیصلس ییہ جلدے عملی شکل دنہ۔ اکادمی ہند سرینگرک کتاب گھر اوس واریاہ کالہ پیٹھہ کینژھا حالاتن مدنظر تہ کینژھا اتھ متعلق امہ ادارہ کہ غیر سنجیدہ رویہ کنۍ ویران۔ وۅمید چھیہ امہ دکانکۍ طاقچہ ین گرد تلتھ رنگہ رنگہ کتابو سیتۍ سجاونہ۔
بہ ییلہ از برونہہ تقریبا 5 وری اتھ دکانس ژاس، اتہِ وچھ میہ کتابہ تھاونہ کہ بنیادی شعورچ کمی۔ کتابہ آسہ بے ترتیبی سان شلفن پیٹھ، واریاہ آسہ گردِ کھیمژہ۔ وۅمید چھیہ مختلف زبانن ہنزہ کتابہ ین اصنافن یا مصنفن ہندین ناون ہندِ مطابق الگ الگ جاین تھاونہ۔ کتابن ہنز خانہ بندی ہیکہ مختلف دورو مطابق تہِ سپدتھ، غرض کانہہ نتہ کانہہ ترتیب گژھہِ آسنۍ۔

تازہ شایع سپزمژن کتابن ہند گوژھ الگ کن ڈسپلے آسن۔ امہ علاوہ گژھۍ رسالہ تہ اخبار تہِ الگ پاٹھۍ کُنہِ مخصوص سٹینڈس پیٹھ تھاونہ ینۍ۔ کاشرِ کتابہ گژھہ نہ صرف سرینگرہ بلکہ جمہِ کس کتاب گھرس پیٹھ تہِ تھاونہ ینہِِ تاکہ جمس منز مقیم دوستن روزن دستیاب ۔ کتابن ہنز انوینٹری (سٹاک) تہ خرید و فروخت گژھۍ کنہِ کمپیوٹر سافٹ ویر کہ مدتہ کرنہ ینۍ تاکہ کۅس کتاب چھیہ تہ کۅس موکلیہ تمیک لگہِ پتاہ تہ تمیک حساب آسہِ ہے پریتھ ساعتہ دستیاب۔ پریتھ فروختس سیتۍ گوژھ اکھ رسید تہِ دنہ ین۔

دکانس منز دستیاب کتابن ہند اکھ مکمل فہرست گوژھ تمن ہند مۅل ہیتھ آنلاین دستیاب تھاونہ ین تاکہ کتابہ ژھانڈن والین راون تہ دکانکۍ چکر لگٲوتھ مۅللۍ دۅہ۔ دکان بند آسنکۍ دۅہ گژھۍ باقی دکانداری کاروبارن مطابق آسنۍ۔

امہ جایہ ہنزِ خوبصورتی تہ سۅ دلچسپ بناونہ خاطرہ گژھۍ سانین اہم ادبی شخصیتن (قدیم و جدید) ہندۍ پورٹریٹ کُنہِ کُنہِ دیوارن پیتھ سجاونہ ینۍ۔

وادس منز گلریز رسالس متعلق اکھ لۅکٹ بحث

واد رسالس منز چھہ گلریز رسالس متعلق اکھ لۅکٹ بحث سپدمت، یمیک ذکر ضروری چھہ۔ عزیز حاجنی یس چھہ پروفیسر محی الدین حاجنی ین وونمت زِ "گلریز” رسالہ اوس تمی کوڈمت تہ پانس سیتۍ ٲسن مرزا عارف تہ امین کامل تھاوۍ متۍ۔ امہ کہ بند گژھنک وجہ اوس یمن دۅن درمیان نفہکۍ پونسہ باگراونک جھگڑہ، یتھ پروفیسر حاجنی ین فیصلہ کٔرتھ دژاو مگر یمو دریو مون نہ۔ یم کتھہ چھیہ عزیز حاجنی ین شیرازس منز چھپیمتس پننس اکس مضمونس منز ونہِ مژہ۔ تمیک اقتباس چھہ:

” گلریز رسالہ چھپییوو کاشرِ زبانۍ منز یہنزوے (مطلب پروفیسر محی الدین حاجنی سنزو) کوششو سیتۍ تہ توتام رود یہ باقاعدہ پاٹھۍ چھپان یوت تام یم (مطلب پروفیسر محی الدین حاجنی) اتھ سیتۍ وابستہ رودۍ۔ ۔۔ یہ رسالہ چلاونس منز ٲسۍ یمن مرزا غلام حسن بیگ عارف تہ امین کامل تہِ سیتۍ ۔۔۔ یہ رسالہ بند گژھنک اصلی وجہ اوس سہ فتنہ یُس کامل صابس تہ عارف صابس نفہک پونسہ بٲگراونس پیٹھ ووتھ۔ تہ یہ فتنہ انزراونہ خاطرہ دژاو میہ (مطلب پروفیسر محی الدین حاجنی) عاقلی فیصلہ زِ گلریز کہ آمدنی ہندۍ ہریمانہ پٲنسہ گژھن محض امہ رسالہ چہ ترقی خاطرہ تھاونہ ینۍ۔” (شیرازہ جنوری فروری 1988)

اتھ پیٹھ سوز کاملن وادس اکھ خط یس واد شمارہ 12 کس دویمس حصس منز چھپیوو۔ اتھ منز ٲسۍ کاملن حاجنی سند یہ بیان غلط ثابت کرنہ خاطرہ یم حقایق پیش کرۍ متۍ:

(1)  گلریزک گۅڈنیک شمارہ دراو نومبر 1952 ہس منز۔ اتھ چھہ بانی مرزا عارف تہ ترتیب امین کامل تہ پرنٹرپبلشر
محمد صدیق کبروی ٹاکارہ پاٹھۍ چھپتھ۔
(2) فروری 1953 ہس اندر ییلہ کامل امہ ادارہ نش الگ سپد (کامل آو ژکہ سبکدوش کرنہ)، مرزا عارفن بناوۍ محی الدین حاجنی تہ عبدالحق برق کامل سنزِ جایہ ترتیب کار۔
(3) اگر یہ رسالہ محی الدین حاجنی یُن اوس تہ امۍ مرزا عارف تہ امین کامل پانس سیتۍ رٹۍ متۍ ٲسۍ تم کتھہ پاٹھۍ ٲسۍ رسالک نفع بٲگران تہ محی الدین حاجنی اوسکھ فیصلہ دوان کٔرتھ۔

اوت تام اوس صحیح زِ عزیز حاجنی ین لیوکھ تہِ یہ تمۍ محی الدین حاجنی یس نش بوز، مگر کامل سند جواب پٔرتھ پزِ ہے تس اکس ادیب سندۍ پاٹھۍ یمن کتھن متعلق تحقیق کرُن، نزِ واپسی جوابس منز یہ لیکھن: "(کامل) چھہ کافی ادبی سفر طے کرنہ باوجود تہِ اپرِ کس حدس تام جبلت خود نمایی ہند شکار۔ یمہ کتھہ ونہِ میہ حاجنی صٲبن مگر کامل صٲب چھہِ دپان زِ یہ چھہ سراسر اپُز! خیر زبان درازی گوو نہ جان۔”

جبلت خود نمایی ہند کس نہ چھہ شکار؟ مگر گلریز رسالہ کین متعلقہ شمارن ہندۍ گۅڈہ ورق چھہ پیش تاکہ محی الدین حاجنی سنز غلط بیانی گژھہِ ننۍ تہ عزیز حاجنی یس گژھہِ احساس ز یژھہ کتھہ چھیہ نہ جذباتن بلکہ تحقیقک تقاضہ کران۔

gul1

یہ چھہ گۅڈنیک شمارہ، یتھ مرزا عارف بانی لیکھتھ چھہ، محی الدین حاجنی سند چھہ نہ کانہہ ناو نشانے، نہ اداریہس منز تہ نہ مندرجاتن منز۔

gul 2

یہ چھہ پٍنژم شمارہ۔ کامل دراو تریمہ شمارہ پتہ، مرزا عارفن رٹۍ محی الدین حاجنی تہ
عبدالحق برق پانس سیتۍ۔

Gul 3

تمہ پتہ 1955 ہس منز بند گژھتھ، آو 1961 منز دوبارہ کڈنہ، مرزا عارفن رٹۍ غلام نبی خیال تہ مرزا حبیب الحسن پانس سیتۍ۔

عزیز حاجنی صابا، وونۍ ما اوس گلریز رسالہ محی الدین حاجنی ین کوڈمت؟

کاشر رسالہ واد (قسط 4 )

وادکۍ اداریہ چھہ گواہ زِ  1980 اندۍ پکھۍ یۅس پُے ادبس کن آے، تمن نش ٲسۍ واریاہ سوال، پتمیو پُیو ہندِ کھوتہ زیادہ سوال، مگر سوالے ٲتۍ۔ تم ہیکۍ نہ سوالو برونہہ پٔکتھ۔ تمو کرۍ صرف سوال، تمو ژھٲنڈۍ نہ تمن ہندۍ جواب۔ پرانین پُین نش یتھی تتھی سہی ٲسۍ جواب۔ سوال اگر کمے ٲسۍ مگر جوابن ہنز تشفی تہِ ٲسکھ حاصل۔ واد کین اداریہن منز ٲسۍ زیادہ تر سوال تہ صرف سوال کرنہ یوان۔

گۅڈنکس شمارس منز آو وننہ زِ ادیب چھہ سماجک ساروے کھوتہ زیادہ حساس انگ، مگر یس "زنا بالجبر” اسہِ سیتۍ سپدان چھہ تمچ گواہی چھہ نہ سون کانہہ ادیب دوان تکیازِ تمن بچارن نہ چھہ کُنہ سماجی ڈھانچک کانہہ تارپود پتہ تہ نہ چھکھ انسان نوِ سرہ سرنک تہ گرنک کانہہ ولولہ۔ مزید چھہ یہ وننہ آمت زِ "ادب چھہ اکہ سماجچ اندرونی خود آگہی، تہ کانہہ نفر ہیکہِ نہ توت تام ادیب بٔنتھ یوت تام نہ تسند پنن شعور بالغ آسہِ۔ یوت تام نہ سہ انسانی حالژ سنیومت آسہِ تہ امہ سیتۍ حیران تہ پریشان گومت آسہِ۔ یوت تام نہ سہ کُنہِ تبدیلی تہ شاید بہتری ہند طلب گار آسہِ۔ ادیبس گژھہِ انسان سندین وجودی تہ ماورایی کھرین ہند زبردست احساس آسن۔ یمنے کھرین ہنز ورگہ وۅکھنے چھیہ ادیب سنز کٲم مگر یہ وۅکھنے گژھہِ تمہ اندازہ کرنہ ینۍ یُتھ زن یمن کھرین ہند شعور پرن والین تہِ شدت سان سپدِ تہ شاید یم کھرۍ کاسنک کانہہ جذبہ تہِ وۅتلہِ تہندین دلن اندر۔”

دویمس شمارس منز چھہ امہ سماجی شعور پتہ تاریخی شعورچ کتھ تُلنہ آمژ تہ یہ وننہ آمت زِ جمٲژ یا فرد  ہیکہِ نہ تاریخ زاننہ ورٲے پننۍ ذاتھ پہچٲنتھ،  پنن وجود رژھرٲوتھ تہ ارتقا پرٲوتھ۔ سارنے متن تہ تہذیبن اتھ معاملس منز پتھ زٲنتھ چھہ وننہ آمت زِ اسلام کہ ابتدایی عروجک اکھ بوڈ وجہ چھہ اسلامک زبردست تہ سرون تاریخی شعور تہ سیتی چھہ یہ تہِ وننہ آمت ز مارکسس  اوس تاریخک شدید ترین احساس تہ کانہہ تہِ بامقصد ہمکال دانشور ہیکہِ نہ مارکسس نظرانداز کٔرتھ۔

تریمس شمارس منز چھہ زبانۍ ہند شعور چکاونہ آمت۔ زبانۍ ہند تنقیدی شعور چھہ انسانی علوم تہ تاریخ زاننہ خاطرہ اہم قرار دنہ آمت۔ وننہ چھہ آمت زِ سماجک  با رعایت تہ با اثر طبقہ چھہ پننۍ زبان اصل تہ معیاری زبان ویندنک کچل بہہ مون کران تہ پننین مفادن قومی حیثیت بخشان۔ لہذا چھیہ زبانۍ ہنز حد بندیہ پھٹراونچ سفارش کرنہ آمژ۔

ژورم شمارہ چھہ شاعری متعلق سوالہ ہا پرژھان زِ شاعری کُس چیز چھہ شاعری بناوان؟ کیا شاعری پرکھاونۍ چھا ممکن؟ شاعری چھہِ کٲتیاہ پہلو۔ ہیتی، فنی، موضوعاتی، اسلوبیاتی، نظریاتی تہ جمالیاتی پہلو۔ سوال چھہ کرنہ آمت زِ یمو منزہ کس پہلو چھہ شاعری، شاعری بناوان؟

پٍنژمس شمارس منز چھہ "آتش چنار” کہ حوالہ پرژھنہ آمت ییلہ شیخ عبداللہ 1975 منز دِلہِ الحاق کٔرتھ آو تہ ریاستس منز 1953 ہچ قانونی حیثیت بحال کرنک وعدہ کرنہ آو، کاشر یس 53 ہس منز سکولن منز اوس تراونہ آمت، کیازِ آو مشراونہ؟ ہندی تہ اردو کیازِ سپدۍ اسہِ پیٹھ مسلط؟

شیمس شمارس منز چھیہ پرن والین ہنزِ متواتر شکایژ جواب دنچ کوشش کرنہ آمژ ز واد چھہ اکثر غیر شایستہ لفظ ورتاوان یس غیر صحت مند چھہ۔ ادارہ چھہ صحت مند صحافتس کھوکھرۍ مفروضہ تہ نظریاتی بلف ؤنتھ رد کران۔ وننہ چھہ آمت زِ زبان شایستہ تہ غیر شایستہ زمرن منز بٲگراونۍ چھہ نہ کانہہ لسانی اصول۔

ستمس شمارس منز چھہِ افسانس متعلق تقریبا تمے سوال پرژھنہ آمتۍ یم شاعری پیٹھ ژورمس شمارس منز پرزھنہ آمتۍ ٲسۍ۔ افسانہ کتھ ونو؟ یہ پرکھاون چھا ممکن؟ اکھ خاص کتھ  چھیہ یہ وننہ آمژ  زِ شاعری منز چھہ نہ کال نظرِ گژھان۔ شاعری ہند وق چھہ روحانی ییلہ زن افسانہ فزیکل وقتک پابند چھہ۔

ٲٹھمس شمارس منز چھہ وننہ آمت زِ کانہہ تہِ چیز مۅلونہ خاطرہ چھیہ اکھ کہوٹ آسنۍ لازمی۔ یم معیار چھہِ نہ کالہ پگاہ بنان بلکہ چھہِ زیٹھہِ انسانی تجربکۍ پیداوار۔ کہوچن ہند تعلق چھہ کُنہِ جمٲژ یا فردہ سندس نظریہ حیاتس سیتۍ۔ اکہ سیتۍ ییہِ بیاکھ پہچاننہ۔ سوال چھہ پرژھنہ آمت زِ اکہ زمانہ چہ کہوچہ ہیکنا بییس زمانس منز لگہ ہار ٲستھ؟ اگر اسۍ حقیقت ہمیشہ بدلونۍ مانون، کہوچہ تہِ بدلن۔ اگر نہ، تیلہِ روزن معیار پریتھ زمانس منز لگہ ہار۔ وننہ چھہ آمت ز از چھیہ نہ اسہِ پرانین کہوچن پیٹھ پژھ روزمژ مگر نوِ کہوچہ تہِ چھہِ نہ بنٲوتھ ہیکان۔

نوۍ مس شمارس چھہِ زہ حصہ۔ اکھ حصہ چھہ مہجور سنزِ صد سالہ برسی پیٹھ اکاڈمی ہندس سیمنارس متعلق۔ اتھ سیمنارس منز شامل کینژن کھۅکھرین دانشورن ہندِ بہانہ چھہ وننہ آمت زِ "سون ناخواندہ دانشور طبقہ چھہ ہونین ہندِ کھوتہ بدتر۔ ہونس گژھہِ اڈج ٹکنہ باپتھ آسنۍ پتہ چھیس نہ کھسنۍ۔” دویمس حصس منز چھہِ ونان زِ سانہِ شاعری ہند بوڈ حصہ چھہ صوفی شاعری یمۍ لکہ شاعری ہند لب لہجہ ورتوو۔ مگر سیتی چھہ وننہ آمت ز "لکہ شاعری (چھہ نہ)  پنن کانہہ لب و لہجہ۔” امہ علاوہ چھیہ عروضس تہ کاشرن لین متعلق تمے کتھہ پننہِ فہمہ موجب وننہ آمژہ یم امین کاملن مہجور سیمنارس منز پننس مقالس منز ونہِ مژہ آسہ۔ کامل چھہ خطس منز لیکھان ” مہجورنس ہتۍ مس وہروادس پیٹھ پور میہ اکھ مقالہ۔ کٲنسہ شاعرس عروضی بنیٲز  پیٹھ سام ہینچ ٲس یہ گۅڈنچ کوشش۔ اتھ اندر اوس اکھ کاشر لیہ نظام ترتیب دنک تجویز پیش کرنہ آمت۔  دۅشوے کتھہ (چھو) حوالہ ورٲے کھتاوِ مژہ۔”

دہمس شمارس منز چھیہ کشیرِ ہندس اعتقادی ارتقاہس مختصر سام ہینہ آمژ۔ بدھ مت کتھہ پاٹھۍ آو ختم کرنہ۔ تمہ پتہ کتھہ پاٹھۍ پھانپھلیوو شیومت یمیک مشہور فلسفی ابھنو گپت اوس۔ وننہ چھہ آمت ” شیو متک مانن چھہ زِ کاینات چھہ آفاقی ژیتہ شکتی ہند ظہور۔ یہے شکتی چھیہ پریتھ رنگس منز جلوہ گر تہ یمۍ انسانن یہ ژیتر پروو، سہ پراوِ نجاتھ۔” امہ پتہ چھہ اسلام یوان یمہ پتہ کشیرِ واریاہ سیاسی، سماجی تہ تاریخی گٲیلہ گے تہ نتیجہ دراو زِ کشیرِ ہنز فلسفیانہ روایت مۅیہ۔ مگر یمو عظیم روایتو چھہ سانین لکہ روایژن پیٹھ سرون اثر تروومت۔ لل دیدِ پیٹھ شیومت تہ شیخ العالمس پیٹھ اسلامک تہ شیو تہ بودھ متک تہِ اثر چھہِ ٹاکارہ۔ صوفی شاعری پیٹھ تہِ چھہ یمن عظیم روایژن ہند اثر نون تہ ٹاکارہ۔ سوال چھہ پرژھنہ آمت زِ موجودہ دورچہ کاشرِ شاعری منز تہِ چھا یمہ روایژ درینٹھۍ گژھان کنہ نہ؟

کہمس شمارس منز چھہ وننہ آمت ” کانہہ تہِ قوم چھہ نہ مذہب کس بنیادس پیٹھ پھبتھ ہیوکمت۔ بدیشی مذہب چھہ نہ قومن ہنز تہذیبی ساخت تہ جبلی عمل بدلٲوتھ ہیکان یعنی مذہبی تبدیلی چھیہ نہ تہذیبی تبدیلی بٔنتھ ہیکان۔ بدیشی مذہب چھہ اکی تہذیب تہ تمدن کین مختلف طبقن منز بینیر پیدہ کٔرتھ یمن پانوانۍ ژوناوان تہ فسادات کرناوان۔ کاشر چھہ پننہِ تہذیب تہ تمدن کنۍ اکھ قوم تہ کاشر س چھیہ پننۍ اکھ تہذیبی تہ تمدنی شناخت تہ مذہبی تہ سیاسی گٲیلو کنۍ گے کاشرۍ سنز تہذیبی شناخت مسخ تہ کاشر آو طبقن تہ ورگن منز بٲگرنہ۔ طبقن تہ ورگن ہنز زبان گیہ بیون۔ ” ٲخرس پیٹھ چھہ تجویز پیش کرنہ آمت "کاشرِ تہذیبی وحدتچ بازیافت چھیہ تیلی ممکن ییلہ زن اسۍ ساری اکھ اکۍ سندین معاملاتن منز شریک سپدو۔”

بہم شمارہ چھہ فلسفہ چکاوان۔ ونان چھہِ  زِ انسانی روحک یس روایتی تصور اسہِ نش چھہ سہ چھہ یہ زِ "روح چھہ اکھ لافانی شے، یتھ پیٹھ نہ وقتک کانہہ اثر چھہ۔ یۅہے روح پرزناونک تلقین چھہِ سانۍ صوفی شاعر کران، مگر زبان چھیہ اکھ تاریخی شے، لہذا اگر اسۍ انسانی شخصیتک یہ تصور پاننٲوتھ کُنہِ فن پارس سام ہیمو تہ کتھہ پاٹھۍ؟ ادبی تنقیدس منز چھیہ تاریخ مخالف نہجہِ سیٹھا سرنۍ مول۔ آفاقی ادب تہ آفاقی جمالیات ہوۍ تصور چھہِ امی نہجہ ہندۍ پیداوار۔ اسہِ پییہ پننین تنقیدی پرمانن نوِ سرہ سام ہینۍ۔ یہ کتھ چھیہ لازمی ز ادب مۅلونہ برونہہ گژھہِ یہ کتھ واضح آسنۍ زِ انسانس متعلق کیا چھہ سون تصور۔” امہ شمارہ کس دویمس حصس منز چھہ مہجور صد سالہ سیمنارس متعلق وننہ آمت زِ مہجور سندس فنس پیٹھ کتھ کرنہ برونہہ پزِ سرہ کرن تسند نظریہ کیا چھہ اوسمت؟ نظریچ اہمیت تہ کارکردگی کیا چھیہ ادبس منز؟ مہجور سندس جمالیاتس، بوطیقا، لسانی اہمیژ پیٹھ چھہِ سوال ہا کٔرتھ وننہ آمت زِ یمن مسلن پیٹھ آو نہ اکاڈمی ہندس سیمنارس منز کانہہ مقالہ پرنہ۔ "سیمنارس منز آو فقط درامن کرنہ۔”

تروٲہم شمارہ چھہ ادبچ تہ تنقیدچ فرق یتھہ پاٹھۍ سمجاوان تہ کاشرس تنقیدس متعلق حکم دوان "ادب یودوے زن کانہہ ادراکی علم چھہ نہ تہ یودوے زن اتھ عقلہِ تہ منظقس سیتۍ زیادہ واٹھ چھہ نہ مگر ادبی تنقید چھہ اکھ منطقی تہ ادراکی علم۔ ادبس متعلق مختلف سوالن نظریاتی سۅتھرس پیٹھ جواب ژھارنس منز چھہِ اسۍ عقلی تہ منطقی دلیلن کٲم ہیوان تہ تنقید بامعنی تہ با مقصد بناونہ باپتھ چھہ لازمی زِ تنقید نگارس گژھہِ عقلی تہ منطقی صلاحیژو واش آسن کوڈمت۔ تمۍ سندۍ تجربات تہ مشاہدات گژھن کافی وسیع آسنۍ تہ تس گژھہِ علمک تہِ اتھہ روٹ آسن۔ بییہ گژھہِ تس انسانی لاشعور سمجنچ صلاحیت آسنۍ۔ بدقسمتی چھیہ یہ زِ ییلہ اسۍ کاشرس ادبی تنقیدس سام چھہِ ہیوان، اسہِ چھہ نہ یُتھ کانہہ تنقید نگار درینٹھۍ گژھان۔”

ژۅدٲہمس شمارس منز چھیہ ساہتیہ اکاڈمی تہ ریاستی کلچرل اکاڈمی تنقیدک ہدف بناونہ آمژہ۔ ساہتیہ اکاڈمی متعلق چھہ وننہ آمت "کاشرس منز یمہ تہِ کتابہ ساہتیہ اکاڈمی ہندِ طرفہ شایع سپزہ، ترجمہ یا تخلیق رنگۍ، (تم) چھیہ حیرانگی ہندس حدس تام زبانۍ رنگۍ غلط تہ موادہ رنگۍ ناموزون۔ ساہتیہ اکاڈمی چھیہ کاشرِ تہذیب تہ تمدنچ بیخ کڈنہ باپتھ زبردست کوشش کران۔ منافق تہ ناہنجار لوکن ہنزہ کتابہ شایع کٔرتھ چھیہ اکاڈمی کاشرکۍ مول پراٹان۔ وننہ چھہ یوان زِ ساہتیہ اکاڈمی منز چھیہ ژونٹھۍ پیٹہِ، ماچھ بوتلہ، شال تہ ڈونۍ زبردست پاٹھۍ چلان تہ ‘ڈونۍ ادبس’ چھہ پوچھر یوان دنہ۔ ساہتیہ اکاڈمی منز چھہِ وۅنۍ کاشرِ زبانۍ ہنز نمایندگی ریاستی کلچرل اکاڈمی ہندۍ ملازم کران تہ کاشرین کتابن یم جہالت پھیلاوان چھیہ، چھہِ انعامہ دنہ یوان۔” ریاستی کلچرل اکاڈمی متعلق چھہِ ونان ” اکاڈمی یہ کینژھا ادبی مجلسہ، ادبی محفلہ تہ سیمنار کرناونس منز کران چھیہ، سہ چھہ حوصلہ بخش مگر یمہ کتابہ تہ رسالہ اکاڈمی ہندِ طرفہ شایع سپدان چھہِ، تم چھہِ مویوس کن۔ اکاڈمی چھیہ کاشر ڈکشنری شایع کرمژ، ڈکشنری سیتۍ وابستہ ادیبن ہنزِ علمیتک اندازہ چھہ ڈکشنری پٔرتھ سپدان۔ ڈکشنری سیتۍ وابستہ لوکھ چھہِ ناخواندہ تہ جاہل۔ یمن نہ چھہ کاشر صرف و نحو معلوم تہ نہ چھہ یمن ڈکشنری ترتیب دنچ صلاحیت موجود۔” یہ اوس دراصل ڈکشنری پیٹھ میانین مضمونن ہند زور یمو منزہ اکھ اتھۍ ژۅداہمس شمارس منز چھپیوو۔