ملہ بابن سادن

shesh

 

میہ دین چھپریوو چانہِ قصدن تے
ملہ بابن سادن

(رحمن ڈار)

سوال: لفظ چھا چھپریوو (کامل) کنہ چھوریو (ساقی)؟

جواب: کاشرس منز چھہ تحقیق کم تہ ذاتی پسند زیادہ چلان۔ کنہِ تہِ بٲتک متن کمۍ کمہِ نسخہ پیٹھہ تل تہ نسخہ کتہِ چھہ، تہِ چھہ کم پہن نظرِ گژھان۔ `کامل سندس صوفی شاعرس چھہ صفحہ پتہ صفحہ حاشیس منز مصرعن ہندۍ مختلف پاٹھ دنہ آمتۍ اکثر کنہِ ذاتی تبصرہ ورٲے۔ کتابہ پتہ کنہ چھہ نسخن ہند فہرست تہِ درج۔ یہ چھیہ امچ خوبی۔ ساقی سندس صوفی شاعرس منز  چھہ خالے کنہِ حاشیہ، ییتہ دیتمت چھن اکثر کاملس سیتۍ اختلاف کرنہ خاطرہ۔ حاشیہ نہ دنک وجہ چھہ یہ زِ تمۍ چھہ پنن متن حتمی زونمت۔ یہ چھیہ امچ کمزوری۔

ساقی چھہ اختلاف کران تہ ونان "چھپریو چھہ صوفی شاعر کتابہِ (کامل سنز) منز درج ییلہ زن عام نسخن منز  چھوریو چھہ”۔ مگر یہ چھہ نہ ونان یم عام نسخہ کم چھہ‏؟ کیا تمن نسخن چھنا کانہہ ناو؟ تحقیق چھہ ونان نسخن ہند ناو ہیتھ ونن ز یتھ یتھ نسخس منز چھہ چھپریو بدلہ چھوریو۔ چلو مون زِ عام نسخہ چھہ پزۍ پاٹھۍ تم نسخہ یمن منز چھوریو درج چھہ۔ اگر یہے حقیقت چھیہ، تیلہ گوژھ نہ ساقی ونن "میانۍ کنۍ چھہ چھوریو درس۔” میانۍ کنۍ ؤنتھ چھہ ساقی پننین عام نسخن ہنز دلیل کمزور بناوان۔ اگر عام نسخن منز "چھوریو” چھہ، پتہ چھہ نہ میانۍ کنۍ چانۍ کنۍ کانہہ معنی تھاوان۔اگر اتہِ نس کانہہ بے معنی لفظ آسہِ ہے تیلہ ہیکہ ہو عام نسخن پیٹھ بحث کٔرتھ زِ اصل لفظ کیا گژھہِ آسن۔ چھپریو تہ چھوریو چھہ بامعنی لفظ تہ دوشوے چھہ اتھ سیاقس منز معنی دوان۔

حقیقت چھیہ یہ زِ واریاہ لفظ چھہ نہ صحیح پاٹھۍ نسخن منز درج یمہ کنۍ تم پریتھ شخص پننہِ حسابہ پران چھہ۔ کیا پتاہ چھپریو/چھوریو تہِ ما آسہِ یتھی کنہِ صورت حالک نتیجہ۔

چھپرُن گو٘و کانہہ مراد حاصل کرنہ خاطرہ منگہ منگ کرنۍ (کاشر ڈکشنری)۔  مطلب چانہِ باپتھ ووتس بہ ملہ بابن تہ سادن تام منگنہِ۔ یہ معنی چھہ نہ اتھ سیاقس منز وۅپر کینہہ۔  ساقی چھہ ونان ” یعنی چانہِ باپتھ گذٲر میہ دۅہ چانہِ برٲنژ نژۍ نژۍ تہ گندۍ گندۍ۔” اتھ معنی یس چھہ نہ "ملہ بابن تہ سادن” مصرعس سیتۍ کانہہ واٹھ لگان۔ البتہ ہیکو ؤنتھ امہ برونہمس مصرعس سیتۍ چھس واٹھ لگان۔ مگر تتھ منز چھہ مسلہ یہ زِ اکثر چھہ سانہِ شاعری منز زہ مصرعہ اکھ شعر بناوان یُس اکھ معنوی کُن بنان چھہ۔ امہ برونہم مصرعہ چھہ نہ اتھ سیتۍ رٔلتھ شعر بناوان۔ دویم یہ زِ تیلہ چھہ "ملہ بابن سادن ”  مصرعہ یتیم گژھان۔

ساقی سند چھوریو ییہ نہ توت تام صحیح ماننہ یوت تام نہ تسندۍ محقق تمن عام نسخن ہندۍ ناو ہین یمن منز چھوریو درج چھہ۔ یا یوت تام نہ تسندۍ نقاد تسندس بیان کرنہ آمتس معنی یس "ملہ باین سادن ” مصرعس سیتۍ واٹھ دِتھ ہیکن۔

کاملن چھہ حاشیس منز "ملہ بابن سادن” مصرعک محتلف پاٹھ تہِ دیتمت۔” گوش تھاو فریادن”۔ ساقی چھہ نہ یہ پاٹھ دوان، حالانکہ مختلف پاٹھ  رژھرنۍ چھیہ محققن ہنز ذمہ داری۔

______

یاونہ ٲسس تن ناون تے
ہاوسہ چھہ نہ چھاون

کیا ونہ کیتۍ گیہ اتھہ ہاون تے
یہ دنیا چھہ تاون

بہ چھس نہ ویتراون تے
تس چھہ نہ کانہہ تہِ باون

(رحمان ڈار)

سوال: یتھے کنہ چھہ بوونہ لفظس معنے لیکتھ کیا ونہ۔ تی چھا؟

جواب: نہ تہِ چھہ نہ۔

کیا ونہ کیتۍ گیہ اتھہ ہاون تے

کامل چھہ مصرعہ یتھے پاٹھۍ دوان۔ سیتی چھس حاشیس منز "کیا” بدلہ "بہ” دوان یُس بیاض رحمان ڈارس منز درج چھہ۔ ساقی چھہ مصرعہ یتھہ پاٹھۍ دوان:

بۅ ونہ کیتۍ گیہ اتھہ ہاون تے

کاشرس منز چھہ /بہ/ بدلہ زنانہ ہندِ طرفہ /بۅ / تہِ رایج۔ ساقی چھہ کامل سندِ حاشیک /بہ/ تُلتھ اتھ /بۅ/ بناوان یمہ کنۍ وۅنۍ یہ ذو معنی بنان چھہ۔ بۅ+ونہ (یعنی میں کہتی ہوں)  تہ بۅون یعنی بتراتھ۔  ظاہر چھہ "بہ ونہ” چھہ نہ زیادہ معنہ سوو، لہذا چھہ ساقی بۅونہ بتراژ ہندِ معنی کنۍ دوان۔  سہ چھہ نہ حاشیس منز کیا ونہ معنی رنگۍ دوان بلکہ چھہ تمۍ حاشیس منز  "کیا ونہ” کامل سندِ پاٹھچ ریفرنسہِ کنۍ دیتمت۔

وۅنۍ چھہ سوال دۅیو منزہ کس پاٹھ چھہ صحیح۔ امیک فیصلہ ہیکہِ صرف ذاتی ترجیح سیتۍ گژھتھ، نتہ گژھہِ نسخن ہنز شہادت آسنۍ۔ کیا ونہ چھہ صوتی طور تہِ تہ معنوی طور تہِ میانہِ خاطرہ زیادہ دلچسپ، یہ زٲنتھ زِ اتھ بٲتس منز کوتاہ اہم قافین ہند آہنگ چھہ۔/ کیا ونہ /چھہ امہ بندہ کہ گۅڈنکہ مصرعہ کین  /یا ونہ / لفظن سیتۍ ہم قافیہ۔ اتھۍ سیتۍ اوت نہ بلکہ دویمہ مصرعہ کہ /چھا ون/ لفظن سیتۍ تہِ۔ یُتے اوت نہ ژورمہِ، پانژمہ تہ شیمہ مصرعہ کین لفظن /تاون/، /ویتراون/ تہ /باون/ لفظن سیتۍ تہِ ہم قافیہ۔ بہ کرہ نہ ذاتی طور یمن قافین ہند ساز ؟/بۅون/ اننہ خاطرہ قربان تکیازِ بۅون أنتھ چھہ نہ شعرکس معنی یس منز کانہہ ہریر یا تبدیلی گژھان۔ بلکہ چھہ امہ مصرعہ پتہ ینہ والہ مصرعہ کس /دنیا/ لفظس مقابلہ اکھ رڈنڈنسی پیدہ گژھان۔ امہ علاوہ چھہ /بو چھس نہ ویتراوان/ مصرعہ کہ /بو  / لفظہ کنۍ تکرار  تہِ پیدہ کران۔ یہ چھہ نہ قافین ہند صوتی تکرار بلکہ اکوے لفظ دویہ لٹہِ ینک تکرار یس اگر کنہِ مخصوص تاثر خاطرہ اگر ورتاونہ آسہِ نہ آمت، مستحسن چھہ نہ ماننہ یوان۔

___________

ستن زرمن میہ چھہ ورتنتے
وصل چھہ ہر ساتن

(رحمن ڈار)

سوال: ساقی چھہ لفظ ورتن بدلاوان تہ دپان درمن چھہ درُس، چھا؟

جواب:  یمو منزہ کس اکھ چھہ صحیح، سہ ہیکہِ رحمن ڈار ؤنتھ۔  توہہ آسہِ نہ توجہ دیتمت۔ کامل چھہ دوان ” وصل چھہ ہر ساتن” تہ ساقی چھہ دوان "وصل چھم ساتن”۔ میانہِ خیالہ چھہ یمن دۅن لفظن یعنی ورتن تہ درمن ہند صحیح آسن نہ آسن دویمس مصرعس پیٹھ دٔرتھ۔ اگر کامل سند دیتمت مصرعہ صحیح چھہ تیلہ چھہ ورتن صحیح، اگر ساقی سند مصرعہ صحیح اوس، تیلہ چھہ درمن صحیح۔

 

یم سوال ٲسۍ مظفر عازم صابن فیس بکس پیٹھ پرژھمتۍ، کٲنسہ دیت نہ جواب۔ میہ دیت جواب۔

شاعری : عشقچ بازیافت

dawlat
اسہِ اوس اکھ شریف نفس دوستا اکھ۔ امۍ سے سنیوو اکس خوبصورت زنانہِ ہند عشق۔ میہ لج امچ خبر۔ کینہہ کال گوو، یہ آو میہ نش تہ دوپن بوز نظم۔ بہ رووس۔ میہ دوپ امس تہ نظمہِ کیا کٲم؟ اچھا امس مسمات ہند ناو مانۍ تو تہۍ کینژھا مثلا تبسم یا بدل کینہہ۔ فی الحال مانو اسۍ تبسمے۔ امۍ دوستن ہیوت کلام بوزناون، دوپن: "کہیں وہ تبسم تو نہیں، وہ تبسم تو نہیں”۔ اکہِ دۅیہ لٹہِ وونس نہ میہ کہنی۔ امۍ دوپ چلو منیبس تور نہ فکرِ ، امس نش آسو کلام بوزنٲوتھ پنن بوس لوژراوان۔ مگر میہ روٹ یہ اکہِ لٹہِ۔ دوپمس "یہ تبسم کۅسا چھیہ؟” یہ ہیوتن وۅشلن۔ اسہِ باسان اگر کٲنسہِ ہند عشق گوو، سۅ گیہ بدمعاشی تہ یہ اوس شریف انسان! بہرحال، امس گیہ گٹھہ کوجہ تہ اتھۍ منز ووتھ "سہ چھنا میون دوس، قریبی دوس۔۔۔” مانۍ تو امۍ سندس دوستس چھہ ناو نذیر تبسم یا یتھے ہیو کانہہ ناو۔ فی الحال مانۍ تون نذیر تبسمے۔ دوپن "یہ چھنا یہ نذیر تبسم، امۍ سنزے یاد چھیم آمژ۔” میہ دوپمس اچھا تورم فکرِ۔ امس آو بتھس پنن رنگ واپس۔

امہ کہانی ہند مطلب چھہ یہ زِ شاعر بننک اکھ بہانہ چھہ پتھ وتھ عشق رودمت۔ عشقک اظہار یا عشقہ چہ ناکامی ہند دۅکھ۔ یہ ہیکہِ کانہہ ٹوٹھ شخص راونک دۅکھ تہِ ٲستھ۔ کینہہ چھہِ خدایہ سندس عشقس منز گرفتار گژھان، یا عشق رسولس منز یا دین کس عشقس منز۔ مثلا سانۍ نوۍ شاعر مشروع نصیب آبادی تہ منظور خالد۔ عشقس چھہِ مختلف پہلو۔ کینژن چھہ بدل عشقک بہانہ گژھان۔ مثلا سون ارشاد ملک یا الطاف اندرابی۔ یہنزِ شاعری ہند بہانہ چھہ کشیرِ ہنزِ آزادی ہند عشق یا تمہ چہ ناکامی ہند دۅکھ، کشیرِ نش دورِ رک دۅکھ۔ یہ تہِ چھہ اکھ عشق۔ اکثرن چھہ عشقک یہ بخار جلدے وسان تہ تہنزِ شاعری ہنز رفتار تہ شوق تہِ چھہ ژھۅکان۔ مگر یم برونہہ پکان چھہِ تم چھہِ امہ ابتدایی جنونہ منزہ نیران۔ تتۍ نے چھہِ نہ بند گژھان۔ برونہہ پکن والۍ چھہِ یہ گۅڈنیک عشق منسٲوتھ شاعری ہندس فنس تہ زبانۍ ہندس تخلیقی ورتاوس منز غم دفایی کران تہ بحیثیت اکھ باضابطہ شاعر برونہہ کن یوان۔ یمن ہنزِ دلچسپی ہند کینواس چھہ ہران۔ یہندِ عشقک کینواس چھہ ہران۔ یم چھہ لٲلہِ ہندس جنونس منز ادبچ دشت نوردی شروع کران۔

یہ دشت نوردی چھیہ عشقک اکھ ضروری حصہ۔ یہ دشت نوردی چھیہ عشقس اکھ وسیع معنہ مطلب دوان تہ اتھ تیزی بخشان۔ یمن ژۅشونی شاعرن تہ باقی واریاہن شاعرن یمن منز بہ زبردست شعری قوت وچھان چھس، چھہ میون مشورہ یی زِ اکۍ سے جایہ چھہ نہ بند گژھن۔ خدایہ، رسول، قوم ہیکوکھ اسۍ مختلف انسانی تجربن منز تہِ لٔبتھ۔ اسۍ ہیکو گلابس پیٹھ شعر ؤنتھ، تارکس پیٹھ نظم ؤنتھ، بسہِ ہنزِ سوارِ پیٹھ شعر ؤنتھ، ٹرینہ ہنزن سوارین پیٹھ نظم ؤنتھ تہ "کہیں وہ تبسم تو نہیں” وننہ ورٲے،تمن ہندِ مشاہدہ چہ باریکی منز پننہ پننہ شوقچ تہ عشقچ بازیافت کٔرتھ۔

khone jigar

شاعر چھہ قطرس منز سمندر بند کران تکیازِ امۍ سنز نظر چھیہ قطرس منز سمندر وچھان۔ یہ چھہ نہ قطرن منز بند گژھان۔ شاعرے چھہ سانہِ سماجک سہ نادرشخص یمس عالم انسانی یس اکی نظرِ وچھنک مۅکجار حاصل چھہ۔ شاعر ہیکہِ نہ خانن منز بند گژھتھ۔ شاعر چھہ اکس مخصوص زبانۍ تام اتفاقی طور محدود ضرور آسان مگر امۍ سند تخیل، امۍ سند سوچ چھہ توت تام واتان ییتہِ زبان صرف اکھ وسیلہ بنان چھیہ۔ یہ چھہ اتھ وسیلس تہِ پٲراو کران تکیازِ یہ چھیہ امۍ سندین تجربن ہندِ محل خانچ ڈیڈۍ آسان۔ امہ ڈیڈِ ہند پٲراو چھہ ضروری مگر اتھ پیٹھ گژھن نہ دلہِ ہنزِ جامع مشیدِ ہنزن ڈیڈین ہندۍ پاٹھۍ بورڈ کھسنۍ۔ مثلا "چھٹن میاں کی چوڑیاں!”

میہ چھیہ سیٹھا خوشی زِ یمن ژۅن شاعرن ہند ناو پیٹھہ کنہِ خالص مثال دنہ کہ غرضہ آو ، تم چھہِ پننہِ پننہِ شاعری پریتھ رنگہ وسعت دنہ چہ کوششہ منز اکھ اکھ قدم برونہہ پکان۔ میہ اوس شاعر بننک شوق مگر حالاتو دیت نہ ساتھ، میانۍ نظر چھیہ کاشرِ زبانۍ لول برن والین یمن شاعرن پیٹھ۔ یمن چھہ زبانۍ پیٹھ تہِ جان دسترس تہ تخیل تہِ وفور۔

میون یہ دوست، یمۍ سنزِ کہانی سیتۍ یہ پوسٹ شروع گوو، چھہ بہترین شاعری کران، یتھ منز تبسمے تبسم چھہ مگر یہ تبسم چھہ وۅنۍ اندۍ پکھۍ کس تمۍ سندس وسیع مشاہدس منز نون نیران۔

[خون جگر وول شعر چھہ ارشاد ملک سند]

فیس بک مشاعرہ جنوری 2015

میہ اوس وعدہ کورمت زِ بہ لیکھہ طرحی مشاعرہ کین غزلن پیٹھ۔ اکس اکس غزلس پیٹھ شعر بہ شعر کینہہ ونن چھہ مشکل، البتہ چھیہ کینہہ عمومی کتھہ پیش۔ و‎ۅمید چھیہ دوستن کھسن یم کتھہ تتھے پاٹھۍ ٹارِ یتھہ پاٹھۍ میہ تہندۍ غزل ٹارِ کھتۍ۔

قاری سندِ حیثیتہ چھس بہ گۅڈنی آہنگ وچھان۔ سہ گوو مطلب زِ غزل چھا میانہِ زیو پیٹھ آرامہ سان کھسان کنہ نہ، پتہ ٲسۍ تن سہ جایہ جایہ پھٹان۔ اگر امہ کین مصرعن ہند آہنگ زیو پیٹھ کھوت، گردان کس صورتس منز نہ بلکہ تلفظ کس صورتس منز چاہے پرنس دوران وقفہ تہِ دنی پین، میون غزل پرنک گۅڈنیک شرط گوو پورہ۔ غزلس منز گژھہِ منظم آہنگ آسن۔ کوتاہ منظم تتھ ہیکن درجہ ٲستھ۔ نقاد سندِ حیثیتہ چھس بہ وزنچ تقطیع وچھان زِ کنہِ جایہ ما چھیہ غزلک وزن ورتاونس منز بل چک گومت چاہے پرنس منز زیو گراے لگہِ یا نہ لگہِ۔ غزلس منز چھہ منظم آہنگ یا کم از کم تقریبا منظم آہنگ، سہ پتہ فارسی ٲسِن یا بدل کانہہ، ضروری۔ وجہ چھہ یہ زِ غزل چھیہ اکھ منظم شعری ہیت یمیک اتھہ روٹ منظم آہنگ بہتر پاٹھۍ کران چھہ۔ یمہ مشاعرہ کہ طرحک وزن اوس فاعلاتن قعلاتن فعلن یُس کاشرِ کہ خاطرہ ہنا مشکل چھہ۔ کاشرِ کہ خاطرہ چھہ اتھ سیتۍ رلون وزن فاعلاتن مفاعلن قعلن زیادہ آسان تکیازِ گۅڈنکس منز چھیہ زہ ژھۅچہ آوازہ اکس جایہ پوتس پتھ یوان۔ امہ کنۍ اگر نہ شاعر وزنہ کین افعالن واقف آسہِ، سہ ورتاوِ یمو منزہ سے وزن یُس کاشرس زیادہ برونہہ ویود تہ سرود آسہِ۔ کینژو شاعرو اوس یۅہے دویم وزن ورتوومت تہ یہ بدل وزن ورتاونس منز ٲسکھ نہ کانہہ غلطی۔ شاید اکھ غزل، یُس پانژو کھوتہ کم شعرن ہند اوس، اوس تیتھ تہِ یتھ منز نہ یمو منزہ کانہہ وزن ورتاونہ اوس آمت بلکہ اوس نہ کانہہ آہنگ زیوِ پیٹھ کھسان ییلہ زن اکس غزلس منز فارسی وزنہ بجایہ کاشر ہیجلۍ وزنک آہنگ اوس۔ ییتہ نس چھہ میون مشورہ زِ چونکہ کُنہِ نتہ کُنہِ منظم وزنک ورتاو چھہ غزلس منز ضروری، اس لیے اگر غزل ونن آسہِ وزن ہیچھن، علمی طور نہ بلکہ ورتاوہ کنۍ، چھہ ضروری۔

mush

ییلہِ غزل آہنگ کہ لحاظہ زیوِ پیٹھ کھوت، بہ چھس قاری سندِ حیثیتہ وچھان زِ امی شاعرن کیا چھہ شعرن منز وونمت، اگر تژھ کانہہ کتھ ونۍ مژ آسین یوس میہ آسانی سان فکرِ تٔر یا فکرِ کھٔژ، بہ چھس واہ واہ کران پتہ ٲسۍ تن یہ کتھ کانہہ مونڈمت خیال۔ مگر نقاد سندِ حیثیتہ چھس بہ وچھان زِ یۅس کتھ وننہ چھیہ آمژ تتھ منز چھا کم سے کم کانہہ ذہانت، سہ چھا دلچسپ، تتھ منز چھا تیتھ کانہہ فکری پہلو یُس میہ معنوی امکانن کن پکناوِ۔ اگر تہِ آسہِ نہ، بہ چھس نہ متاثر گژھان۔ بہ چھس یہ تہِ وچھان زِ کانہہ ویود مضمون چھا دلچسپ اندازس منز وننہ آمت۔ مثلا اوترے دژ میہ مثال:

دلبری ہند یہ ما چھہ کانہہ انداز
حال باون ہیمے ونکھ تل تل

یہ چھہ اکھ ویود مضمون مگر یہ یمہ اندازہ "تل تل” ورتٲوتھ کاشراونہ آمت چھہ، تمہ کنۍ تہ بییہ "یہ ما چھہ” ؤنتھ پننہِ زانکاری پیٹھ شک کرُن زِ کیا پتہ چھہ یہ تہِ ما چھہ دلبری ہند اکھ انداز، یم تہ یتھی نکتہ چھہِ اتھ شعرس منز میانۍ دلچسپی ہرراوان۔ اتھ شعرس منز چھہ تعجب تہِ، شک تہِ تہ سوال تہِ۔ دویمہ مصرعہ کہ "ہیمے” لفظکۍ معنوی امکان تھٲوۍ توکھ تام یک طرفے۔ بہ چھس یہ تہِ وچھان زِ شعرہ کین مصرعن منز کٲژاہ لسانی صفایی، نفاست، صحت چھہ۔ لفظ اگر پانوانۍ واٹھ کھین، زیادہ لفظ ورتاونچ چھیہ نہ ضرورت پیوان۔ بہ چھس وچھان کانہہ بالکلے نوو مضمون یا تجربہ چھا کنہِ شعرس منز پیدہ گومت۔ بہ چھس شعرہ کین رمزن، اشارن، پیکرن، استعارن تہ علامژن تہِ سنان۔ بہ چھس شعرہ چہ موسیقی تہِ سنان۔ بہ چھہ شعرہ فارمہ ہندس کلہم ورتاوس تہِ داد دوان۔

وۅنۍ کروکھ کینہہ شعر پیش یم میہ ذاتی طور کنہِ وجہہ کنۍ پسند آیہ۔ اگر یمن منز تہند کانہہ شعر یا تہندِ پسندک کانہہ شعر آسہِ نہ میہ گژھہِ معافی دنۍ۔ پیٹھمین نکتن پیٹھ گژھہِ غور کرُن مگر میٲنس پسندس تہ ناپسندس گژھہِ نہ زیادہ اہمیت دنۍ۔ میہ چھہ نہ کنہِ ساعتہ مرزا غالب سند شعر تہِ ٹارِ کھسان۔ امہ موکھہ نہ زِ غالبس کیا چھیہ کمی بلکہ امہ موکھہ زِ میۍ اندر چھیہ کیہہ تام کمی۔

چانۍ حالت تہِ بدل ما بوزم
دود ہجرک چھہ دلن سرود کوتاہ
(علی شیدا)

ژھایہ نے کُن ژہ نظر تھاواں چھکھ
قد تہِ مینُن، چھہ گومت تھود کوتاہ
(علی شیدا)

اوش تہ بتہ کھیوو میہ رلٲوتھ شیدا
وٲنسہِ کھیمہا تہ ہودے ہود کوتاہ
(علی شیدا)

ہفت اقلیم چھہ دوریر وۅں دلن
وصلہ کے بریم تہِ بناں سیود کوتاہ
(علی شیدا)

توگ نہ شاید یہ پِلو میۍ لایُن
نتہ اسماں چھہ ونتہ تھود کوتاہ
(شاہد دلنوی)

دود وجودے مکایہ کانڈکۍ پاٹھۍ
پرارِ رودس وۅں نارہ دود کوتاہ
(شاہد دلنوی)

چھم یہ ازلے میہ لیکھتھ ہول تقدیر
بے کرن سیود تہ کرن سیود کوتاہ
(منظور یوسف)

پریتھ اکس چھکھ زہ اچھن منز تیلان
چھکھ ژہ منظور لکن ویود کوتاہ
(منظور یوسف)

واہ یہ شبنم چھلاں گلابس روے
پوز محبت یوہے چھہ سیود کوتاہ
(ہاشم مسعود)

نارہ حسدنہِ دزاں صمد کوتاہ
یی زِ برجناتھ کھوت میہ تھود کوتاہ
(خالد حسین)

آبہ قطرن لیکھن پیوو دریاو
زانہِ قلمے دل تس دود کوتاہ
(منظور خالد)

ٲنہ پھٹرِتھ پانس کر پٲراو
ہاو ذاتس منہ چھکھ شود کوتاہ
(منظور خالد)

میہ نہنوۍ واوہ رنگہِ  سٲری نشاں وچھ
سیکیل تھاویم رچھتھ کانہہ پود کوتاہ
(حمیدہ شاہ اختر)

بہ چھس یہ تہِ وچھان زِ شاعرن کم کم قافیہ چھہِ ورتاوۍ متۍ۔ علی شیداہن چھہِ واریاہ قافیہ ورتاوۍ متۍ یمو منزہ کینہہ برونہہ کنکۍ چھہ نہ۔ شاہد دلنوی ین چھہ مقامی تلفظس فایدہ تلتھ قافین منز نویر پیدہ کرنچ کوشش کٔرمژ۔ کنہِ ساعتہ چھہ کانہہ نوو قافیہ، یُس نہ عام آسہِ یا زیادہ ورتاونہ آمت آسہِ، کانہہ نوو خیال ذہنس منز انان۔ یمن غزلن ہندۍ زیادہ تر خیال یا مضمون چھہِ منڈۍ متۍ۔ یمن منز چھہ نہ کانہہ نویر۔ پریتھ شاعرس پزِ یہ سوچن زِ اگر سہ تہِ ونہِ یہ میہ پتاہ چھہ، میہ آسہِ نہ تمۍ سندس شعرس منز کانہہ دلچسپی۔ اگر سہ تہِ ونہِ یہ تمس پانس پتاہ چھہ مگر یہ آسیس معلوم، ثیقہ پاٹھۍ معلوم، زِ میہ چھہ نہ پتاہ، تسند شعر آسہِ میانہِ خاطرہ دلچسپ۔ اگر شاعر تہِ ونہِ یہ تمس پانس پتاہ آسہِ، تسند شعر آسہِ تمۍ سندِ خاطرہ بے مزہ۔ شاعرس چھہ لامحالہ تہِ ونن یہ نہ تمس پتاہ آسہِ تہ میہ۔ امیک مطلب گوو یہ زِ نویر گژھہِ شاعرس نشی پیدہ گژھن، ادہ واتہِ میہ نش نویر۔ اتی نے کیا چھہ مطالعہ بکار یوان۔ کیا چھہ وننہ آمت تہ کتھہ پاٹھۍ۔ اتی ہیکہِ شاعر وچھتھ تمۍ سندِ خاطرہ کیا گنجایش چھیہ۔ اکثر شعر چھہِ عروضی تہ ہیتی خانہ پری۔ نہ چھہ مضمونس منز نویر نہ وننہ کس اندازس منز تہ نہ لفظن ہندس ورتاوس منز۔

شعری فارمہِ ہنز فنی تنظیم

رحمن راہی سنز اکھ کتاب چھیہ "شعر شناسی” یتھ منز کاشرین بآتن پیٹھ الگ الگ تنقیدی تبصرہ لیکھنہ چھہِ آمتۍ۔ تنقیدی تبصرہ کس ناوس پیٹھ چھہ اکثر بٲتن ہند معنی تفصیلہ سان بیان کرنہ آمت۔ اتہِ نس چھہ سوال پیدہ گژھان شعر شناسی کتھ ونو؟ شعرن ہند معنی بیان کرن یودوے اکھ بنیادی قدم ہیکہِ ٲستھ، کیا شعر شناسی چھا شعرن ہند معنی بیان کرنس تامے محدود؟ یم کاشرۍ بٲتھ کتابہِ منز شامل چھہِ تم چھہِ زیادہ تر لوکہ بٲتھ یعنی تم چھہِ نہ غالب سندۍ خیال بند شعر زِ تشریح ہنز پییکھ ضرورت۔ نہ چھہ یمن منز کانہہ مشکل لفظ یا تلمیحہ یمن ہنز وضاحت ضروری بنہِ۔ یہ کتھ چھیہ اہم تہ یمیک احساس اتھ کتابہِ منز بالکل چھہ نہ گژھان چھیہ یہ زِ لکہ بٲتن ہنز شعریت چھیہ نہ تمن منز موجود خیالن اندر۔ مثالہ پاٹھۍ نمون اسۍ اکھ لوکہ بٲتھ یُس اتھ کتابہِ منز شامل چھہ تہ وچھو زِ راہی کتھہ پاٹھۍ چھہ اتھ بٲتس پران۔ گۅڈنیتھ کرون یہ بٲتھ تتھے پاٹھۍ درج یتھہ پاٹھۍ یہ اتھ کتابہِ منز چھہ:

ہن ہن چھم لولہ چانہِ بٲرتھ
زۅلہ چھیم نو سۅندٲرے سۅندرے

تیر مژگاں دتۍ تھم دٲرتھ
گٲمہ جگرس پنجرے پٲنجرے
دٲدۍ لد چھس کوت ہیکہ لٲرتھ
زۅلہ چھیم نو سۅندٲرے سۅندرے

وژھہِ وٲنجہِ ہاوے مژرٲوتھ
پہۍ پن زٲن ہرٲیو ہریو
مژھہِ مژھ بند زن گژھے لٲرتھ
زۅلہ چھیم نو سۅندٲرے سۅندرے

گچھہ کُٹھہِ نے تھاوے وتھرٲوتھ
لچھہ ناویو مندورے سانہِ بیہہ
اچھہ دٲر زن روزے پٲرٲوتھ
زۅلہ چھیم نو سۅندٲرے سۅندرے

لالہ گومے باغہ منزہ نیرتھ
پوش لاگٲس گۅندٲرے گۅندرے
کینہہ نہ منگہ سے ییم نا پھیرتھ
زۅلہ چھیم نو سۅندٲرے سۅندرے

پانژن شین صفحن ہندس تبصرس منز چھہ راہی معنی بیان کرنہ علاوہ زہ کتھ بٲتس متعلق ونان۔ اکھ امہ کس قافیس متعلق تہ بیاکھ امہ کین بندن ہنزِ ترتیبہِ متعلق، سہ تہِ تمن منز بیان کرنہ آمتین وٲرۍ داتن ہندِ منطقہ کہ تعلقہ۔
وچھو وۅنۍ راہی کیا چھہ فرماوان:

ss

"زندگی ہند کن تہ کیول مدعا چھہ تس وۅنۍ مدنوارس سیتۍ اکھ بے پھروک میل۔ مگر یہ روایتی موضوع یمہ آیہ ورتاونہ آمت چھہ سہ ورتاو چھہ تیوت خۅش آہنگ تہ بے شونک زِ بوزن وٲلس زن چھیہ مٲنتھر لگان تہ تس چھہ نہ بٲتس منز موجود کینژن فنی خامی ین کن تہِ سہل سہل ظۅن گژھان۔” (صرف چھہ ونان "یمہ آیہ ورتاونہ آمت چھہ”۔ یہ چھہ نہ ہاوان زِ کمہ آیہ چھہ ورتاونہ آمت۔)

بہرحال، گویا راہی یس چھیہ اتھ بٲتس منز فنی خامی نظرِ گژھان۔ وضاحت چھہ کران:

"بٲتس منز ورتاونہ آمتۍ قافیہ چھہِ امچ ٹاکارہ مثال۔ ہرگاہ قافیہ بندی ہندین کلاسیکل اصولن کن گژھو تیلہِ زن گژھۍ نہ مثالے دٲرتھ تہ لٲرتھ ہوین لفظن سیتۍ نیرتھ، پٲرٲوتھ ہوۍ لفظ ہم قافیہ گنزراونہ ینۍ۔”

مگر سیتی چھہ ونان اتھ بٲتس "منز باونہ آمتۍ جذبات چھہِ تیتۍ وتشل زِ یہ فنی بے قاعدگی چھیہ نہ کانہہ عیب باسان۔” حقیقت چھیہ یہ زِ فنی خامی چھیہ فنی خامی تہ کنہِ تہ صورتس منز ییہ یہ عیب گنزراونہ یوت تام نہ امیک کانہہ جواز یا ضرورت یا مجبوری آسہِ۔ (یم وتشل جذبات چھہ تمام لوکہ شاعری منز، اتھ منز کیا خاص کتھ چھیہ یمہ کنۍ قافیس کن ظۅن چھہ نہ گژھان، تہِ گوژھ ونن۔)

اکہ طرفہ چھہ ونان زِ یہ چھیہ فنی خامی تہ بییہ طرفہ چھہ ونان یہ چھہ نہ عیب، وجہ چھہ بیان کران ز "بوزن وول چھہ نہ اتھ ظۅنسے گژھان۔ میہ وون بوزن وول۔ پرن والۍ سنز کٔر نہ میہ کتھ تکیازِ گیون بٲتن گژھہِ نہ چھٲپی نظمن ہنز نظر کرنۍ۔”

گویا اگر نہ اتھ اچھو سیتۍ وچھو، قافیچ خامی چھیہ نہ محسوس گژھان۔ مگر راہی چھہ نہ اتھ بٲتس اچھو سیتۍ تہِ سنان، بوزتھ چھہ نہ سوالے۔ گۅڑنچی کتھ چھیہ یہ زِ بٲتھ چھہ تتھ ہیتس (فارمہِ) منز یتھ اسۍ وژن ونان چھہِ۔ یہ ژینن چھہ ضروری۔ راہی چھہ اتھ بٲتھ ؤنتھ امہ چہ فارمہ نظر انداز کران حالانکہ روایتی شاعری منز چھیہ فارم اہم۔ بٲتھ چھیہ نہ کانہہ شعری ہیت، نہ لفظ منظومہ یُس راہی اکثر ورتاوان چھہ۔ اگر امہ بٲتچ ہیت مدنظر روزِ، امچ تنظیم تہِ ییہ برونہہ کن۔ فن چھہ فارم ورتاونک طریقہ تہ سلیقہ۔ یوت تام نہ فارم بدِ ییہ کڈنہ، فنچ کتھ کتھہ پاٹھۍ سپدِ۔ قافین منز بے قاعدگی وچھنک وجہ چھہ یہ زِ راہی چھہ اتھ بٲتس نظمہ ہندۍ پاٹھۍ پران تہ ہیرہ پیٹھہ بۅن تام کنے قافیہ تصور کران۔ دویم غلطی یۅس راہی کران چھہ، سۅ چھیہ یہ زِ سہ چھہ بٲتہ کین قافین "قافیہ بندی ہندین کلاسیکل اصولن” ہنزِ نظرِ وچھان؟ کم کلاسیکل اصول؟ تہ چھیہ نہ پتاہ۔ دراصل چھہ تس برونہہ کنہِ غزلہ کین قافین ہنز اصول بندی۔ حالانکہ قافیہ چھہِ غزلہ علاوہ مثنوی ین منز تہِ ورتاونہ آمتۍ۔ تم گژھن وچھنۍ تہ پتہ گژھہِ کتھ کرنۍ۔

وژنس ہیکن الگ الگ بندن منز الگ الگ قافیہ یِتھ۔ اتھ بٲتس پیٹھ اگر سرسری نظر تہِ تراوو، الگ الگ قافیہ نیرن ننۍ۔ پریتھ بند کس گۅڈنکس تہ تریمس مصرعس چھہ کنے قافیہ۔ الگ الگ بندن چھہ الگ الگ قافیہ۔ مگر راہی چھہ اتھ ہیرہ پیٹھہ بۅن تام اکوے قافیہ زٲنتھ پران۔ حالانکہ

گۅڈنکس بندس چھہ /دٲرتھ/ تہ /لٲرتھ/ قافیہ۔
دویمس بندس چھہ /مژرٲوتھ/ تہ لٲرتھ/ قافیہ۔
تریمس بندس چھہ /وتھرٲوتھ/ تہ پٲرٲوتھ/ قافیہ۔
ژورمس بندس چھہ /نیرتھ/ تہ /پھیرتھ/ قافیہ۔

قافیک تعریف کیا چھہ؟ کتابی اصطلاحن ہندس گھن چکرس منز گژھنہ ورٲے، تکرار تہ تنوع۔ یوہے چھہ قافیک اصول۔ لفظہ چین ہشن آوازن ہند تکرار۔ تکراری آوازِ برونہہ ینہ واجنہِ آوازِ ہند تنوع۔ مثلا گۅڈنکہ بند کین قافین منز چھہ تکراری حصہ /ٲرتھ/ تہ تنوع وول حصہ چھہ /د/ تہ /ل/۔

وچھو وۅنۍ دویمہ بندک قافیہ امی اصولہ مطابق۔ تکراری حصہ چھہ /اِتھ/ (یعنی زیر تہ تھ) تہ متنوع حصہ چھہ /و/ تہ /ر/۔

ژورمہِ بندک قافیہ چھہ تکراری حصہ /یرتھ/ تہ متنوع حصہ /ن/ تہ /پھ/۔

تریمس بندس چھہ نہ قافیہ امہ اصولہ کنۍ مکمل پاٹھۍ کارگر، مگر اگر گۅڈنیک لفظ زیٹھراوون تہ /وتھرٲوتھ/ بدلہ /وتھٲرٲوتھ/ پرون (یہ چھہ بقول راہی گیون بٲتھ)، یہ قافیہ تہِ چھہ صحیح۔ /ٲرٲوتھ/ چھہ تکراری حصہ تہ /تھ/ تہ /پ/ متنوع حصہ۔ راہی ییلہ یمن بٲتن منز اکثر لفظ زیٹھراوان چھہ (مثلا پوش لاگس بدلہ پوش لاگٲس، بٔرتھ بدلہ بٲرتھ)، یہ لفظ کیازِ ہیکون نہ زیٹھرٲوتھ /وتھرٲوتھ/ بدلہ /وتھٲرٲوتھ/ پٔرتھ؟ بیاکھ کتھ چھیہ یہ زِ یم بٲتھ چھہ سینہ بہ سینہ پکان تہ یمن ہندۍ لفظ تہ بند تام چھہ تبدیل سپدۍ متۍ۔ امہ بٲتک یہ بند تہِ چھہ باسان اتھ جوڑنہ آمت۔ ثبوت ییہ برونہہ کن۔

کاشرِ لکہ شاعری منز کمہِ کشادگی سان چھہ قافیہ ورتاونہ آمت، تمیک اندازہ گژھہ "شعر شناسی” ہندس مصنفس میانہِ کھوتہ زیادہ آسن۔ مثالہ خاطرہ وچھون حبہ خاتونہِ ہند یہ وژن:

پھۅلہ ونہِ زیٹھے چھے میون سالو
لالو از وۅلو مالین میون

اتھ وژنس منزچھہِ یم لفظ ہم قافیہ گنڈنہ آمتۍ:

سالو، شولو، ڈانبلو، ڈلو، بلبلو، للو، لالو، ازلو، پِلو، حالو، مثالو

یتھے پاٹھۍ حبہ خوتونہِ ہندے بیاکھ وژن:

وار چھم نہ میلنس وٲروِ چھس گرے
وۅں پراریو پوشہِ تھرے تل

اتھ منز چھہ پھرے تہ کرے لفظن سیتۍ دارے گنڈنہ آمت۔ بییس پاٹھس منز پھرے تہ کرے لفظن سیتۍ بلے گنڈنہ آمت۔

بییس وژنس منز:
کاوۍ وہیونم ارۍ ننہِ نہے
از ییہ یار بہ ناوسے

نہے لفظس سیتۍ عنبرے تہ روستِس لفظس سیتۍ لٔجِس گنڈنہ آمت۔

بیاکھ مشہور وژن چھہ:
ژہ کمیو سۅنہِ میانہِ برم دتھ نیونکھو
ژیہ کہیو گٔیی میانۍ دے

اتھ منز چھہ تریمس تریمس مصرعس منز اندس پیٹھ قافیہ یوان۔ یم لفظ چھہ ہم قافیہ ماننہ آمتۍ:
یوان، پاوان، ہاران، چھاوان، شہلاوان، مازان، یوان

گویا کاشرِ لکہ شاعری ہنز قافیہ بندی چھیہ نہ اردو تہ فارسی غزلہ چہ "کلاسیکل قافیہ بندی” مطابق۔

زیر بحث بٲتک فنی زاوۍ جار چھہ یہ زِ بندن منز الگ الگ قافیہ ورتٲوتھ تہِ چھہ سارنے قافین ہند آہنگ ہیوے تھٲونہ آمت۔ وچھو امہ بٲتک بیاکھ فنی پہلو یس راہی بالکل نظر انداز چھہ کران بلکہ یتھ کن تسنز نظر چھیہ نہ گمژے۔

گۅڈنکہ تہ تریمہ مصرعہ کہ قافیہ علاوہ چھہ دویمس دویمس مصرعس منز تہِ قافیہ اننہ آمت۔ مثلا سۅندٲرے سۅندرے، گۅندٲرے گۅندرے، بیترِ۔ اتھ قافیس پیٹھ تہِ ہیکہِ دھوکہ گژھتھ زِ یہ چھہ وژنس منز ہیرہ بۅن کنے، حالانکہ حقیقت چھیہ یہ زِ یہ قافیہ چھہ دویمہ دویمہ مصرعہ کین اکھ اکس سیتۍ ینہ والین لفظن منز پانوانۍ قایم۔ یہ چھیہ امہ بٲتچ فنی خوبصورتی۔ یہ قافیہ چھہ متنوع لفظہ تکرارس پیٹھ مشتمل۔ سۅندٲرے/سۅندرے، ہرٲیو/ہریو، گۅندٲرے/گۅندرے۔ یمن لفظن پیٹھ نظر ترٲوتھ چھہ پیٹرن (ترتیب) نون نیران۔ گۅڈنکس لفظس منز چھہ دویمہ لفظک مصوتہ /زبر/ زیٹھرٲوتھ /ٲ/ بناونہ آمت۔ یہ پیٹرن وچھتھ ہیکو اسۍ ونتھ زِ راہی چھہ یہ مصرعہ غلط نقل کران:

گٲمہ جگرس پنجرے پٲنجرے

نہ صرف چھہ راہی لفظ اکھ اکۍ سنزِ جایہ لیکھان بلکہ چھہ سہ زیوٹھ مصوتہ غلط جایہ تھاوان۔ پنجٲرے بدلہ چھہ پٲنجرے دوان۔ وجہ یہ زِ بٲتہ کین لفظن تہ قافین ہنز کمپلیکس تنظیم چھیہ نہ تس درینٹھی آمژ۔ صحیح مصرعہ گژھہِ آسن:

گٲمہ جگرس پنجٲرے پنجرے

دویمس دویمس مصرعس منز چھہ لفظن ہند یہ التزام قایم سواے تریمس بندس منز یتھ منز یتھہ پاٹھۍ پیٹھہ وننہ آو گۅڈنکس تہ تریمس مصرعس منز قافیہ تہِ کارگر چھہ نہ۔ صاف چھہ زِ یا تہ چھیہ زبانۍ روایژ منز اتھ بندس تبدیلی سپزمژ نتہ چھہ یہ بند جوڑنہ آمت۔ یمۍ شاعرن بٲتس منز ییژاہ پیچیدہ تنظیم ورتٲومژ آسہِ تس آسہِ ہے نا قافیچ فنی خامی دور کرنس کن کانہہ ظۅن گومت؟

ٲخرس پیٹھ فن چھہ فارمہ ہندس ورتاوس منز، لفظن ہندس ورتاوس منز، خیالاتن ہندس ورتاوس منز (خیالن منز نہ بلکہ تہندس ورتاوس منز)، گۅڈنچین دۅن صورتن منز چھہ امہ بٲتک فن ظاہر۔ راہی چھہ صرف معنی بیان کران یُس پریتھ کٲنسہِ ہندِ خاطرہ ٹاکارہ چھہ تہ اکھ موضوعی یا شخصی کارگزاری چھیہ۔ لہذا چھہ نہ تہنزِ معنی بیانی پیٹھ میہ کانہہ اعتراض۔ میون یہ پوسٹ سمجھنہ خاطرہ پٔریو "شعر شناسی” منز امہِ بٲتک تبصرہ صفحہ 182 پیٹھہ186 تام۔

امہ وژنہ کس فنی پہلوس پیٹھ راہی سند اعتراض چھہ بے معنی بلکہ چھہ نہ امیک فنے تس درینٹھۍ آمت۔

بٲتہ کس ترتیبس متعلق چھہ راہی ونان زِٲخری بند چھہ "ٲخرس پیٹھ گیونہ بجایہ منزے پیش کرنہ یوان۔” امہ پتہ چھہ ونان زِ "منطقی حسابہ اگر وچھو تیلہِ گژھہِ ٲخرک یوہے بند زنجورِ ہند گۅڈنیک کور آسن مگر شاعری منز چھیہ منطقی ترتیبہِ کھوتہ زیادہ جذباتی ترتیبے کارفرما آسان۔” یہ چھہ نہ ونان زِ یہ جذباتی ترتیب کتہِ آیہ۔ اگر بٲتھ اکہِ ترتیبہ گیونہ یوان چھہ، راہی کیازِ اتھ پننۍ ترتیب دِتھ "حذباتی ترتیب” ناو دوان؟

یہ بٲتھ چھہ امین کاملن تہِ "لولہ نغمہ” ناوۍ پننہِ کتابہِ منز دیتمت۔ تمۍ چھہ تمی ترتیبہِ یہ بٲتھ دیتمت یمہ ترتیبہِ یہ گیونہ یوان چھہ۔ راہی سند دیتمت ٲخری بند چھہ کامل سنزِ ترتیبہِ منز بٲتک گۅڈنیک بند۔ کامل چھہ نہ راہی سند دیتمت گۅڈنیک بند دوانے۔ تمۍ چھہِ ترییے بند دتۍ متۍ۔ ممکن چھہ کاملس آسہِ یہ بند پیومت نتہ ما آسین نہ یہ علاوہ بند گیونس منز بوزمت۔

شاعری ہند ترجمہ تہ تعریف: منیب الرحمن بنام رابرٹ فراسٹ

راتھ (20 دسمبر) سپزہ زہ کتھہ۔ سیٹھا ذہین فیس بک یوزر سبرین ملک کھول رابرٹ فراسٹ سند مشہور زمانہ مقولہ پننس والس۔ مقولہ چھہ "شاعری چھیہ تہِ یہ ترجمس منز راوان چھہ۔” میہ وچھ یہ تہ کٔرم لفظن گندتھ اتھ مقولس منز تبدیلی تہ کھٲلم دوشوے فراسٹ سند مقولہ تہ پنن لفظہ گیند پننس والس۔ میون مبدل اوس ونان: "شاعری چھیہ تہِ یہ ترجمس منز راوان تہ لبنہ یوان چھہ۔” اتھ پیٹھ ہیتِن کمینٹ ینۍ۔ تقریبا سٲری تی ونان یہ فراسٹن وونمت چھہ۔ مظفر عازم صٲبس اگر کنہِ پوسٹس سیتۍ برابری آیہ نہ تم چھہِ نہ تتھ لایک کران۔ تمو کور کمینٹ زِ امہ برونہہ زِ تم کرن اتھ لایک، منیب الرحمن یا بییہ کانہہ ہیکیا اتھ تبدیل شدہ شکلہِ مثال دتھ واش کٔڈتھ۔ عازم صٲب چھہِ تجربہ کار، تہ سینیر ترجمہ کار تہ یمن چھہ ترجمہ خاطرہ ساہتیہ اکاڈمی ہند ایوارڈ تہِ میولمت۔ بہ چھس اکثر گۅڈہ کتھ ونان تہ پتہ تمیک مطلب سوچان۔ میہ دوپ نسا وۅنۍ یہ بہ لیکھتھ گوس تہ تہِ،امیک دفاع کرن چھہ ضروری تہ لوگس سوچنہِ زِ فراسٹ سندِ مقولک یہ میون لفظہ گیند کیا کیا ہیکہِ بٲوتھ؟

بیاکھ کتھ سپز اتھۍ دوران یہ زِ فاروق شاہین سند مسیج ووت زِ تمن یس وعدہ میہ رسالہ خاطرہ مضمون دنک کورمت اوس، سہ کر گژھہِ پورہ۔ میہ اوس اقرار کورمت زِ اکس ہفتس منز سوزہ شاعری متعلق کانہہ مضمون (حالانکہ میہ چھہِ نہ مضمون لیکھنی تگان)۔ کینہہ اوسم نہ فکرِ تران زِ لیکھہ کیا۔ یم دۅشوے کتھہ اکی ساعتہ سپدنہ کنۍ آو میہ خیال زِ چھنا صلاح بہ لیکھہ پننس اتھۍ لفظہ گندس متعلق کینہہ سطرہ۔

٭٭٭٭
عام طور چھیہ یہ شکایت کرنہ یوان زِ ترجمس منز چھیہ شاعری راوان۔ اگرچہ اتھ منز واریاہ صداقت چھیہ مگر امیک مطلب چھہ نہ یہ زِ اسۍ کیا ہیکو نہ ترجمہ کٔرتھ یا ترجمس منز کیا چھیہ نہ شاعری ممکن۔ ایاز رسول نازکین اوس کمینٹ کورمت زِ شاعری چھیہ دراصل خاموشی یۅس اظہارس منز راوان چھیہ۔ یہ خیال چھہ شاعرو وزِ وزِ ورتوومت زِ زبان چھیہ اظہارس برونہہ کنہِ کم پیوان۔ مثلا کچھ اور چاہئیے وسعت مر ے بیاں کے لئے۔ اتھ منز کٲژا صداقت چھیہ۔ غالبن یہ کینژھا وون تمہِ علاوہ تہِ اوسا کینہہ یہ نہ سہ زبانۍ ہنزِ تنگی کنۍ ؤنتھ ہیوک، تہِ ماپنہ خاطرہ چھہ نہ اسہِ نش کانہہ پیمانہ، تاہم چھہ یہ خیال صحیح ماننہ یوان زِ زبانۍ چھیہ پننہ حدبندی۔ مگر امہ باوجود چھیہ نوین تخلیقی جہان ہنز دریافت شاعری منز جاری۔ ترجمک تہِ چھہ یۅہے حال۔ شکایت بجا مگر ترجمہ کاری چھیہ جاری تہ دنیاہچ واریاہ شاعری چھیہ ترجمہ کہ ذریعے اسہ تام واتان۔

Robert Frost(رابرٹ فراسٹ اکھ عظیم فن کار)

شاعری ہند اکھ تعریف چھہ نہ ممکن تکیازِ شاعری کتھ ونو اتھ متعلق چھیہ نہ بڈین بڈین نقادن ہنزو کوششو باوجود کانہہ حتمی را‎ے قایم سپزمژ۔ رابرٹ فراسٹ چھہ شاعری تتھ چیزس ونان یُس نہ اکہ زبانۍ پیٹھہ بییس زبانۍ منز منتقل سپدِ۔ اکھ مجرد تعریف۔ ظاہری سوتھرس پیٹھ چھہِ نہ لفظن ہند پننہِ زبانۍ اندر اشارتی مۅل، وزن تہ آہنگ، زبانۍ ہندین لفظن ہند مخصوص صوتی آہنگ، ردیف قافیہ بیترِ ترجمس منز منتقل سپدان۔ فراسٹ اوس پابند تہ مقفی شاعری کران۔ شاعری ہندۍ تم چیز یم زبانۍ یا کنہِ مخصوص فارمہِ تابع آسن چھہِ نہ ترجمس منز منتقل سپدان۔ چونکہ از کل چھہِ نہ واریاہ ادیب (مثلا رحمن راہی، شفیع شوق، بیترِ) شاعری خاطرہ یم چیز ضروری زانان لہذا کیا تمن چیزن ہنز منتقلی چھا ممکن یم یمو خصوصیتو بغیر لیکھنہ آسن آمتۍ؟ اگر اتھ تہِ جواب انکارس منز آسہِ، گویا ترجمس منز چھہِ نہ صرف یمے ظاہری چیز یم راوان چھہِ، بلکہ یمو علاوہ تہِ واریاہ کینہہ یس کنہِ تجربس یا متنس شاعری بناوان چھہ۔ ترجمس منز یُس چیز منتقل کرُن سہل چھہ، سہ چھہ خیال یعنی تفصیلی معنی۔ چونکہ نظمہِ منز چھہ خیالک دخل غزلہ کس شعرس مقابلہ زیادہ، امیک ترجمہ چھہ نسبتا آسان۔ نظم چھیہ اکثر خیالس منطقی زیچھر دوان یعنی اتھ منز چھہ خیالک پوچھر یمہ کنۍ یژھہِ نظمہِ ہند خیال منتقل کرن ممکن سپدان چھہ۔ شانتی ویر کولن اوس کمینٹ کورمت زِ شاعری ہند پوز امتحان چھہ ترجمہ۔ تہند مطلب چھہ شاید یہ زِ نظم گژھہِ ترجمہ کس امتحانس منز کامیاب سپدنۍ۔ واریاہ نظمہ چھیہ تم یم پزۍ پاٹھۍ ترجمس لایق آسان چھیہ۔ ازکل چھیہ زیادہ تر یژھے نظمہ لیکھنہ یوان۔ یعنی تم نظمہ یم ترجمہ کٔرتھ بییس زبانۍ ہندین پرن والین ہندِ خاطرہ تہِ معنی تھاوان آسن۔ یہ چھہ نہ ناممکن زِ ازکۍ کینہہ ناودار کاشرۍ شاعر (بہ زانن اکھ تمۍ سندی وننہ کنۍ) آسن پننہِ نظمہ گۅڈہ انگریزی پاٹھۍ لیکھان تہ پتہ تمن کاشر ترجمہ کٔرتھ بطور کاشر اصل پیش کران۔ یمن شاعرن ہند توجہ چھہ یتھ کتھہِ پیٹھ آسان زِ یہنزِ نظمہِ منز گوژھ نہ تیتھ کانہہ چیز آسن یُس ترجمس منز راوِ۔ یم چھہِ شاعری منز مقامیت بدلہ آفاقیت ژھاران۔ نظم چھیہ تمام مقامی زولانو نشہِ شاعری آزاد کرنچ کوشش۔ چونکہ شعری موسیقی چھہ زبانۍ تہ لسانی آہنگس سیتۍ تعلق، لہذا چھہِ نظم نگارن ہنز اکھ جماتھ اتھ "کنہ سۅکھ” (راہی) ؤنتھ باونہ بدل ہاونس پیٹھ زور دوان۔ یعنی یم چھہ آوازِ کھوتہ زیادہ شکلہِ پیٹھ بھروسہ کران۔ لسانی شکل چھیہ امیج خاص کر بصری امیج۔ آوازِ ہند ترجمہ چھہ ناممکن، شکلہِ ہند ترجمہ چھہ ممکن۔ امہ تبدیلی سیتۍ چھہ شاعری ہند صوتی یا زبانی کردار مٔشرتھ امیک تحریری کردار اہم بنان۔ شاعری چھیہ گیونہ تہ بوزناونہ کھوتہ زیادہ کاغذس پیٹھ پیش کرنک چیز بنان تہ وارہ وارہ سٔنتھ پرنک چیز بنان۔ شاعری چھیہ کنہ کھوتہ زیادہ اچھ ہند معاملہ بنان۔ مقامیت گیہ شاعری منز تم چیز ژھارنۍ یم اکس لسانی ماحولس سیتۍ مخصوص آسن تہ آفاقیت یمو چیزو نش دور روزُن۔

غزل چھہ مقامی شاعری ہنز مثال۔ امیک ترجمہ چھہ ناممکن نے تہ مشکل ضرور، خاص کر ییلہ اتھ منز خیالن یا مضمونن ہندِ سرینرہ بدلہ کیفیت تہ لہجہ کہ مدتہ پرن والۍ سند احساسی تہ فکری ردعمل وتلاونہ آسہِ آمت۔ یتے یوت نہ بلکہ خاص کر ییلہ لفظن منز ایہام یا کثرت معنی پیدہ کرُن مدعا آسہِ۔ غزلس منز چھہ ویسے تہِ شاعرن اکہِ کھوتہ زیادہ معنی ین منز لفظ ورتاونس مزہ یوان۔ امہ شاعری ہند تعریف چھہ فراسٹ سند مقولہ بنان۔ تاہم ونہ بہ واریاہن شعرن ہند ترجمہ چھہ ممکن ییلہ زن اکہ شعرک خیال تُلتھ سہ دویمہ زبانۍ ہندِ مزازہ مطابق لفظ بہ لفظ بدلہ نٔوس شعری اظہارس منز پھرنہ ییہ۔ اتھۍ وون میہ شاعری چھیہ تہِ یہ ترجمس منز راوان تہ لبنہ یوان چھہ۔ مثالہ پاٹھۍ نیتون یہ شعر:

دلبری ہند یہ ما چھہ کانہہ انداز
حال باوُن ہییمے ونکھ تُل تُل

یہ تہِ چھہ بنیادی طور ترجمے مگر یہ چھہ نہ بغیر شاعری، نہ چھہ یہ لفظ بہ لفظ ترجمہ۔ اتھ منز چھیہ نہ شاعری رٲومژ۔ ٹھیک چھہ اتھ منز چھیہ نہ ہوبہو سۅے کتھ تتھے پاٹھۍ آمژ یتھہ پاٹھۍ غالب سندس شعرس منز چھیہ، مگر اتھ منز چھہ غالب سندے خیال نِتھ شعر بناونہ آمت۔ ہوبہو منتقلی چھیہ نہ ترجمہ کیا اکۍ سے زبانۍ منز تہِ ممکن۔ یعنی یہ چھہ نہ ممکنے زِ اکوے شعر کیا ہیکون ہوبہو دویارہ ؤنتھ۔ یعنی اگر زبان تہِ اکاے آسہِ، شاعر تہِ اکوے آسہِ توتہِ چھہ نہ یہ ممکن زِ سہ کیا ہیکہِ کانہہ شعر دوبارہ ہوبہو ؤنتھ۔ گویا یہ چھیہ نہ صرف ترجمچ کمی بلکہ یمہِ کتھہِ ہنز زِ کانہہ تہِ خیال یا تجربہ ہوبہو دہراوُن چھہ نہ ممکن۔ فراسٹ سند مقولہ چھہ اتھ حقیقتس کن تہِ اشارہ۔ کامل سندس شعرس منز چھہ سہ چیز راوان یُس غالب سندس شعرس شعر بناوان چھہ، تاہم چھہ اتھ منز اکھ نوو مگر غالب سندس شعرس سیتۍ ہم آہنگ شعری صورت حال پیدہ گژھان۔ اکھ چیز چھہ راوان مگر اسۍ چھہِ بیاکھ چیز لبان۔ کامل سند بیاکھ شعر چھہ:

گل ورگہ اگر آو تہ کانہہ کانہہ خۅش بخ
کم جان تہ جانانہ چھہِ میژِ تل سۅسرن

یہ خیال چھہ نہ صرف غالب بلکہ تس برونہہ تہِ کٲتہو شاعرو ورتوومت۔ مثلا:
[مثالہ بییہ ساعتہ]

کامل سندس تہ غالب سندس شعرس برونہہ یودوے کتھ اکے چھیہ وننہ آمژ، کانہہ شعر چھہ نہ ہوبہو۔ خۅد خیالس منز چھیہ نہ کانہہ شاعری تکیازِ امہ شعرک مرکزی خیال ہیکون نثرس منز تہِ بیان کٔرتھ، مگر سہ آسہِ نہ شعر۔ شعر چھہ بہرحال زبانۍ ہندس ورتاوس منز۔ غلطی الگ یتھہ پاٹھۍ محمد یوسف ٹینگن غالب سندین شعرن ہندس کامل سندس ترجمس مںز ہاوِ مژہ چھیہ، پرفیکٹ یا مکمل ترجمہ چھہ ناممکن تکیازِ یتھہ پاٹھۍ پیٹھہ کنہِ وننہ آو، وۅپر زبان کیا اکۍ سے زبانۍ منز تہِ چھہ نہ لفظک نعم البدل بیاکھ لفظ موجودے۔ ترجمہ چھہ امپرفیکٹ کار یُس اتھ امپرفیکشنس منزے شاعری پیدہ کران چھہ۔ ترجمہ چھہ نہ نقل بلکہ بدل۔ عام طور یم ترجمہ اسۍ کاشرِ شاعری ہندۍ انگریزی زبانۍ منز کران چھہ، سہ چھہ دراصل اسہِ پننی خاطرہ آسان۔ اسۍ چھن سہ واپس پانے پران حالانکہ ترجمہ چھہ بییس لسانی کلچرس خاطرہ۔ تمن ہندِ خاطرہ گژھہِ سہ قابل قبول آسن۔ سانۍ شاعر چھہ پننین نگارشاتن ہند انگریزی ترجمہ وچھتھ خوش گژھان۔ تمن چھہ باسان امہ سیتۍ ہریوو تہندس کلامس مۅل۔ اصل تہِ چھہ پننسے کلچرس منز ترجمہ تہِ پننسے کلچرس منز روزان۔ امیک چھہ نہ کانہہ مقصد۔ یہ چھہ فن پارہ مۅلناونہ کین غیر ادبی معیارن منز شامل۔

ترجمچ بنیادی ضرورت چھیہ یہ زِ ترجمہ کرن وٲلس گژھہِ تمہِ زبانۍ ہنز سرنۍ واقفیت آسنۍ تاکہ اصلس منز موجود معنی کین تمام رنگن ہیکہِ مدنظر تھٲوتھ۔ یہ چھہ نہ ضروری زِ تمام رنگن گژھہِ سہ کۅم کٔرتھ ہیکُن مگر تمن پیٹھ نظر آسنۍ چھیہ ضروری۔ کاشرۍ ہیکن اردو پیٹھہ جان پاٹھۍ ترجمہ کٔرتھ تکیازِ اسہِ چھیہ اردو زبانۍ پیٹھ جان دسترس۔ اتھ ضرورتس سیتۍ سیتۍ چھہ یہ اصول اہم زِ ترجمہ کرن وول گژھہِ ٹارگیٹ زبانۍ ہند اصلی بولن وول آسن یعنی یہ گژھہِ تسنز مادری زبان آسنۍ۔ مثلا اسۍ ہیکو انگریزی پیٹھہ کاشرس منز ترجمہ کٔرتھ مگر کاشرِ پیٹھہ انگریزی یس منز ترجمہ کرُن چھہ سانہِ خاطرہ مشکل، تکیازِ یودوے اسہِ امہ زبانۍ ہنز بخوبی واقفیت چھیہ، اسہِ چھیہ نہ اتھ پیٹھ تخلیقی طور مادری دسترس، نہ چھہِ امہ کس روزمرہس واقف۔ یہ چھیہ سانہِ خاطرہ اکتسابی زبان۔ ٹارگیٹ زبانۍ منز چھیہ نہ مادری دسترسے یوت ضروری بلکہ گژھہِ موادس سیتۍ تہِ واقفیت آسنۍ۔ مطلب یہ زِ شاعری ہند ترجمہ کرن وول گژھہِ آیڈیلی پانہ شاعر آسن یا کم از کم شاعری ہندس فنس واقف آسن۔ ازکل چھیہ نہ دۅن لسانی کلچرن منز روزن تہ پریتھن والین ہنز کمی۔ یمے ہیکن کامیاب ترجمہ کرن والۍ بٔنتھ۔

اکھ فن پارہ یا شعر اکہِ زبانۍ پیٹھہ بییس زبانۍ منز منتقل کرُن گوو ترجمک عام تہ محدود تصور۔ بیاکھ تصور (میون ذاتی تصور) چھہ سہ یُس محمود گامی، رسول میر تہ تمہ زمانہ کین شاعرن ہنزِ کارکردگی منز نظرِ گژھان چھہ۔ تمو کٔر مخصوص شعرن ہنزِ ترجمہ کاری بجایہ/علاوہ فارسی زبانۍ ہنز شعری روایتے کاشرِ زبانۍ منز منتقل۔ تمو انہِ فارسی شاعری ہنزہ ہیئتہ، لفظیات تہ مضمون تہ تشبیہہ تہ استعارہ، عروضی نظام کاشرس منز۔ یہ چھہ ترجمک اکھ وسیع تر تصور یُس نہ امہ رنگہ شاید کنہِ زبانۍ منز پہچاننہ آمت چھہ۔ امی تصور منزہ چھیہ یہ کتھ نیران زِ کینژن صورت حالن منز کوتاہ اہم تہ ضروری چھہ ترجمہ بنان۔ یہ کتھ تہِ ترجمہ منزہ کتھہ پاٹھۍ چھہ واریاہ کینہہ راورتھ تہِ واریاہ کینہہ لبنہ یوان۔ یہ چھہ اکس سورونس یا اکی سے جایہ بند گمتس یا زمانس سیتۍ قدم نہ تلن وٲلس ادبس نٔو زندگی بخشان۔ میون ترمیم شدہ مقولہ چھہ اتھۍ حقیقتس کن اشارہ کران۔

اگر سنجیدگی سان وچھنہ ییہ تمام ادب چھہ ترجمے، چاہے سہ پتہ بییہ زبانۍ پیٹھہ ٲسۍ تن یا اکی زبانۍ ہندِ اکہ فن پارہ پیٹھہ بییس فن پارس تامک تخلیقی سفر، منتقلی در منتقلی۔ راونچ تہ لبنچ داستان!

٭٭٭٭
پیٹھمہ سطرہ تحریر کٔرتھ سوز میہ فاروق شاہینس رسالہ خاطرہ بدلے کیہہ تام۔ یمہ بہانہ لیوکھ سہ گوو بدل تحریر سیتۍ پورہ۔ مگر کینژس کالس رودس تس پرژھان اگر نہ سوزمت تحریر پسند ییہ بدل کینہہ سوزہ تیلہِ، خیال اوس یمے سطرہ سوزنک۔ تورہ جواب نہ بدل کینہہ سوزو، بدل کینہہ سوز مگر بییہ رود یہ سوزنے، لہذا کھالون بلاگسے۔

بہارۍ، بہ ہارۍ کنہ بِہارۍ؟

par

نذیر آزاد چھہ لفظن تتھہ پاٹھۍ سنان زِ بازۍ گار سندۍ پاٹھۍ چھہ اکہِ منزہ زہ لفظ کٔڈتھ حیران کران۔ مثلا رسول میر سند یہ شعر:

یس کارِ تھزر آسہِ شمع روے آتش خوے
پروانہ تس یود مارِ در احرام نگارو

نذیر آزادس آیہ اتھ پروانہ لفظس منز (پروا + نہ) زہ لفظ بوزنہ۔ اتھ چھہِ ونان باریک بینی۔ ونان چھہ "دویم معنی چھہ (پروا+نہ) یعنی تس چھہ نہ پرواے تہِ زِ سہ اگر میہ مارِ۔”

امی آیہ چھہ سہ رسول میرنین شعرن منز کٲتہن لفظن ہندۍ گُپتھ معنی تہ شکلہِ دریافت کٔرتھ اسہِ برونہہ کنہِ تھاوان۔

رسول میرن بیاکھ شعر چھہ:

میہ و ۅندہ دودم پراران وندسے پوگل تہ پرستان
بہارۍ ژھانڈتھ پہارہ دینگی کونگی ژہ ہاوتے پان

غلام محمد شاد چھہ "بہارۍ” لفظہ بدلہ "بہ ہارۍ” دوان۔ پہارہ بدلہ پہاڑ تہ دینگی بدلہ ڈینگی۔ بہرحال یمن جایہ ناون ہند چھہ نہ کانہہ بوڈ مسلہ۔ یہند مسلہ چھہ پھورک مسلہ۔ البتہ "بہارۍ” تہ "بہ ہارۍ” چھہِ زہ الگ معنہ والۍ لفظ۔ کُس اکھ چھہ صحیح؟ بقول نذیر آزاد، ناجی منور چھہ ونان "وندہ کہ مناسبتہ گژھہِ دویمس مصرعس منز بہار آسُن نزِ ہارۍ۔ ہارِ سیتۍ گوژھ تیلہِ طوطہ آسن۔”

نذیر آزاد چھہ ناجی منور سندس بیانس منز رسول میرنین شعرن منز مناسبتہ ژھانڈنس تایید لبان۔

ایہام کس دلدادہ نقادس کیازِ نہ اتھ "بہارۍ” لفظس منز اکی ساعتہ "بہارۍ” تہ "بہ ہارۍ” پرنس مزہ یوان۔ یمہ حسابہ سہ لفظن سنان چھہ، "بہارۍ” لفظس منز موجود "بہ ہارۍ” لفظن ہند صوتی ہشر گوژھ نہ نظرانداز گژھن۔ باقی شعرن ییلہ اکہِ کھوتہ زیادہ معنی کڈنس مزہ یوان چھس یتھ شعرس منز کیازِ چھہ بہارۍ لفظسے پیٹھ تھکھ کڈان؟

میہ تام ہے آسہِ ہے، بہ پرہ ہا اتھ بہارۍ لفظس علاقہ بہار تہِ۔ مذاق یکطرف، چونکہ غلام محمد شادن چھہ بہارۍ بدلہ "بہ ہارۍ” دیتمت، لہذا چھن تس غلط ہاونہ خاطرہ پنن اصول ایہام تہِ مشروومت۔

یم کار چھس بہ تہِ کران۔ خۅش گوش زِ بہ چھس نہ کنے زون!

کاسہ گدا چانۍ

jam

رسول میر سند اکھ شعر چھہ:

در دورِ حسنت چشمہ وچھتھ کاسہ گدا چانۍ
خورشید تے جمشید ہیتھ چھی جام نگارو

اتھ شعرس متعلق چھہ بقول نذیر آزاد، غلام رسول ملک پننس رسول میر مونوگرافس منز حافظ شیرازی سندس اکس شعرس سیتۍ مقابلہ کٔرتھ ونان ” فرق صاف ظاہر ہے، رسول میر خورشید اور قدیم پارس کے شہنشاہ جمشید کو یکجا کرتے ہیں ۔۔۔(جو) آپس میں کوئی نقطۂ اشتراک نہیں رکھتے۔”

یہ نقطۂ اشتراک ہاونہ خاطرہ چھہ نذیر آزاد یم مناسبتہ ژھانڈان:
1) معشوقہ سنزہ اچھ تہِ چھیہ بانہ چالہِ یمن منز اوش، شراب یا نور بٔرتھ چھہ
2) خورشید تہِ چھہ بانہ چالہِ یتھ منز زژہ یا نور بٔرتھ چھہ
3) جمشید سند جام تہِ چھہ بانہ چالہِ یتھ منز دنیا بٔرتھ چھہ
4) کاسہ چھہ بمعنی بیچھہ بانہ یُس ژھور چھہ تہ برنہ یُن چھیہ امچ خواہش
5) مگر خورشید تہ جمشید سندس جامس چھیہ محبوبہ سنزن اچھن برونہہ کنہِ بیچھہ بانک درجہ یعنی بانہ چالہِ اسنہ کنۍ خورشید تہ جام جمشیدس منز ہشر تہ یم چھہِ شعرس منز مشبہ کھوتہ کم تر ماننہ آمتۍ۔ یتھہ کنۍ چھیہ یمن ہنز مناسبت

اوت تام گیہ کتھ صحیح۔ نذیر آزادن چھہ شمس الرحمن فاروقی سندیو تحریرو پیٹھہ لفظن ہند اول وانگن کڈتھ تمن ہنزہ مناسبتہ تلاش کرنہِ ہیوچھمت۔مگر نہ چھیہ غلام رسول ملکس پتاہ تہ نہ نذیر آزادس زِ یہ خورشید تہ جمشید کیازِ چھہِ رسول میرن یکجا کرۍ متۍ۔ امیک جواب چھہ تتھ روایتس منز یتھ اسۍ وۅنۍ واقف چھہِ نہ۔ حقیقت چھیہ یہ زِ جمشید و خورشید ناوہ چھیہ مہروہاہ، وامق عزرا تہ ہما ہمایون، شیرین فرہاد تہ لیلی مجنون دلیلن ہندۍ پاٹھۍ اکھ عشقیہ داستان یۅس مثنوی ین منز بیان چھیہ کرنہ آمژ۔ مولانا رومی تہِ چھہ کران۔ جمشید چھہ چین کس بادشاہ سند نیچو تہ خورشید روم کس بادشاہ سنز کور۔ جمشید چھہ خورشیدس خوابس منز وچھان تہ تس عاشق گژھان۔ پتہ تس حاصل کرنہِ نیران تہ جنگ و جدل کران۔ بہرجال، یۅہے چھہ اتھ شعرس منز یم زہ ناو یکجا کرنک اصل وجہ۔ داستان پرتھ نیرِ رسول میر سندس شعرس شاید بییہ ہن پھٹھ۔

پس نذیر آزادنہِ لفظہ تفتیش برونہہ چھیہ جمشید و خورشید اتھ شعرس منز اکھ تلمیح۔

محمد یوسف ٹینگ چھہ پننس مرتب کلیاتس منز لفظن ہندین معنی ین سیتۍ جمشید تہ خورشید وول مصرعہ دوان تہ معنی رنگۍ چھس لیکھان "ایرانک بادشاہ یس جام جم اوس یمہ منزہ ساری دنیاہک حال بوزنہ اوس یوان۔” گویا ٹینگس تہِ چھیہ نہ خبر ز جمشید تہ خورشید چھیہ عشقہ داستان یہند ذکر اتھ شعرس منز چھہ آمت۔

jamshed

ناجی منور چھہ کلیات محمود گامی یس منز صفحہ 204 پیٹھ زبانۍ روایتک اکھ بٲتھ دوان یُس یتھہ پاٹھۍ شروع چھہ گژھان:

قیصر رومنۍ ہاے دخترۍ یے
ٲخر درایکھ پرۍ یے ذاتھ

بۅنہ کنہِ چھہ قیصر رومس پیٹھ نوٹ لگٲوتھ لیکھان "یہ بٲتھ چھہ باسان کمہِ تام مثنوی ہند حصہ یۅسہ زن رٲومژ چھیہ۔” ضرور چھہ یہ امی جمشید و خورشید مثنوی ہند حصہ اوسمت یۅس محمود گامی ین ترجمہ آسہِ ہے کرمژ یا ممکن چھہ پورہ آسہِ ہن نہ کرمژ۔ قیصر رومنۍ کور ٲس خورشید۔ کشیرِ منز چھہ نہ از وۅنۍ امہ مثنوی کیا امہ عشقیہ داستانک تہِ کانہہ علم۔ رسول میرس چھہ امیک علم اوسمت تہ شاید آسہِ ہن محمود گامی سنز مثنوی تہِ وچھمژ۔

دورِ حسنت چہ جایہ چھہ غلام محمد شاد گِردِ چشمت دوان۔ اصل کیا چھہ بہ ہیکہ نہ کینہہ ؤنتھ مگر یہ چھہ نہ تران فکرِ یم حضرات کتھہ پاٹھۍ چھہ اکۍ سے لفظس کتہِ کور واتناوان؟ ییژ فرق وچھتھ چھہ میہ شک گژھان امہ شعرکۍ ساری لفظ چھا تہِ رسول میرنۍ ۔ بہرحال،  نذیر آزاد چھہ دور لفظس متعلق ونان ” شعرس منز چھہ دورِ حسنت وننہ آمت تہ دورک اکھ معنی چھہ حکومت۔” یہ چھیہ حقیقت، مگر نذیر آزاد چھہ شعرکس پننس بحثس منز مشراوان زِ دورک مطلب چھہ گردش تہِ یُس جام کہ مناسبتہ زیادہ اہم چھہ۔

اچھا جمشید اوس اکھ ایرانی حکمران تہِ۔ اوستا زبانۍ منز چھہ جمشیدک مطلب "تابان” تہِ یۅس آفتاب (خورشیدچ) تہِ اکھ خاصیت چھیہ۔ فردوسی چھہ ونان زِ جمشید اوس کلس پیٹھ سۅنہ سند تاج تھاوان تہ ییلہ سہ لعل و جواہرات وٲلس تختس پیٹھ بیہان اوس سہ اوس زن آسمانس منز آفتاب آسان۔

برآمد بر آن تخت فرخ پدر
به رسم کیان بر سرش تاج زر

گویا کیا خورشید تہ کیا جمشید یم چھہ اکی چیزکۍ زہ پاس۔

ٲخرس پیٹھ کرن بہ مرزا غالب سند اکھ شعر پیش یُس رسول میر سندس شعرس سیتۍ پرن گژھہِ۔ خبر غلام رسول ملکس کونہ یہ شعر یاد پیومت؟ نذیر آزادس تہِ چھہ نہ یہ شعر ذہن نشین نتہ کرہے سہ اتھ ضرور نقل:

زکاتِ حسن دے اے جلوۂ بینش کہ مہر آسا
چراغ خانۂ درویش ہو کاسہ گدائی کا

ابرو دو نون، چشمان دو صاد

32

نذیر آزادن چھیہ رسول میرس پیٹھ  بہترین کتاب لیچھمژ۔ کتابہِ منز چھہ تواریخ تہ ادبی رشتہ کنۍ یہ ہاونہ آمت زِ رسول میر اوس کاشرس منز تمی شعریاتک ترجمان یۅس تمہ وقتہ فارسی تہ اردوس منز رایج ٲس۔ یہ چھیہ اہم کتھ۔ دویم اہم کتھ یۅس اتھ کتابہِ منز چھیہ، سۅ چھیہ رسول میر نین واریاہن شعرن ہنز تفہیم فارسی اردو شعریات کہ تصورہ مطابق۔ شعرن متعلق چھہ واریاہ تم نکتہ واضح کرنہ آمتۍ یمن کن نہ عام طور ظۅن گژھان اوس۔

وژنک اکھ بند یتھ متعلق نذیر آزادن غلام محمد شاد روٹمت چھہ، چھہ یتھہ پاٹھۍ:

وچھتون لیوکھ کمۍ اوستاد
ابرو دونوں چشماں دو صاد
لوح جبیں بینی قلم
کن تھاو رۅخ ہاو اے صنم

غلام محمد شاد چھہ امیک گۅڈنیک تہ دویم مصرعہ یتھہ پاٹھۍ دوان

وچھتون سہ کمۍ کور اوستاد
ابرو دو گوں چشماں دو صاد

دوگوں لفظس چھہ شاد معنی دوان : زہ کمٲنۍ

آزاد چھہ لیکھان:”اسۍ کرو فرض ِ کٲنسہِ لسم جو قسمکۍ لغت نگارن آسہِ امیک معنی کمان درج کورمت تو پتہ تہِ چھیہ نہ رسول میرنس شعرس سیتۍ اتھ کانہہ مناسبت۔ دراصل مناسبتس سیتۍ لۅے ُخۅے نہ آسنہ کنۍ چھہ شاد صٲبن ابرو کمان ترکیب نظرِ تل تھٲوتھ گۅڈہ معنی ژھونڈمت تہ پتہ لفظ تھرمت۔”

حقیقت چھیہ یہ زِ غلام محمد شاد چھہ نہ لفظ تھران بلکہ اتھ دوگون لفظس چھہ معنی تھران، خبر تم کتہِ چھہ اونمت یہ دوگون لفظ، شاید کنہِ قلمی نسخہ پیٹھہ۔ نذیر آزاد چھہ یہ مصرعہ یتھہ پاٹھۍ دوان یُس صحیح چھہ

ابرو دو نون چشمان دو صاد

نذیر آزادس ٲس نہ مثال میسر۔  ابرووس چھیہ فارسی روایتس منز نونس سیتۍ تشبیہہ دنہ آمژ۔ یہ چھہ نہ رسول میر سند پنن اختراع۔ شاید آسہِ ہے رسول میرس مولانا سنزِ مثنوی ہند یہ شعر مدنظر:

نون ابرو صاد چشم و جیم گوش
بر نوشتی فتنہء صد عقل و ہوش

اردوس منز تہِ چھہِ یم یتھے پاٹھۍ ورتاونہ آمتۍ۔ مثلا سراج اورنگ آبادی سند یہ شعر

ہیں صاد اس کی آنکھیں اور قد الف کے مانند
ابرو ہے نون نادر گیسو ہے لام گویا

مولانا چھہ یہ شعر اکس مناجاتس منز پیش کران، یمہ تعلقہ رسول میر سندِ بندکہ گۅڈنکہِ مصرعک تہِ جواز پیدہ گژھان چھہ۔ رسول میر چھہ اتھ وژنس منز معشوق سندۍ تعریف کران تہ اتھ بندس منز معشوق سند ۍ کنۍ خدایس تعریف تہ خدایہ سندۍ کنۍ معشوقس تعریف۔ امہ چی ریفرنس چھہ اوستاد لفظ، مگر ٹینگ سندس متنس منز چھہ گۅڈنیک مصرعہ عجیب گرامر پیش کران، شاد سند دیتمت مصرعہ چھہ  شاید زیادہ موزون۔

ٹینگ چھہ یہ مصرعہ پننس کلیاتس منز دۅن جاین دوان۔ پننس تبصرس منز تہ متنس منز۔ مگر دۅشونی جاین چھہ "دو نون” بدلہ "دونوں” دوان یُس زن غلط۔ چھہ۔ دراصل چھہ ٹینگ مچھہِ پیٹھ مچھ ماران۔ تمۍ یتھ نسخس پیٹھ یہ وچھہ تتہِ تہِ چھہ یہ "دونوں” د‏تھ، "دو” پتہ لفظہ ژھینچ جاے تراونہ ورٲے "نوں” یمیک مطلب "دۅشوے” چھہ۔ نذیر آزاد چھہ بلۍ ونان زِ ٹینگ سندس متنس منز چھہ مناسبتک خیال نظرِ گژھان۔ اگر ٹینگن یہ صحیح لیوکھمت آسہِ ہے (نونس چھہِ نہ فارسی یا اردو یا کاشرس منز "نوں” ونان، بییہ چھیہ دو تہ نون لفظن درمیان لفظہ جاے ضروری)، شاد کیازِ لگہِ ہے "دونوں” لفظک بیہ محل تہ بیہ مطلب ورتاو وچھتھ اتہِ نس کانہہ مطلب وول لفظ ژھانڈنہِ۔ افسوس چھہ زِ تس آو نہ صحیح تہ برونہہ کنیک لفظ ٲستھ تہِ "نون” اتھہِ۔

امہ اکہِ بندہ علاوہ چھیہ نہ ٹینگ تہ شاد سندس متنس منز کانہہ فرق۔ البتہ چھہ اکھ مصرعہ ٹینگ غلط دوان

موسیقار زن ونہِ زار

شاد سند مصرعہ  چھہ صحیح باسان۔

سازندر زن وایہِ تار

رسول میرن چھہِ کینژن شعرن منز معشوق سندِ ظاہری حسنہ کین تعریفن منز فارسی شعری روایت چہ دیکھا دیکھی منز حروف تہجی ورتاوۍ متی یتھہ پاٹھۍ اسۍ پیٹھمس بندس منز وچھان چھہِ۔ نذیر آزاد چھہ ٹینگس تھر کھٲلتھ ونان "میرن (کور) پزۍ پاٹھۍ بقول محمد یوسف ٹینگ یہ (عربی/فارسی/اردو) رسم خط مستحکم تہ قلعہ بند۔”

ٹینگس چھیہ یتھنے چیزن ہنز تلاش آسان۔ سہ چھہ امہ قسمہ کیو بیانو سیتۍ پننہِ تنقیدچ آرایش کران۔ ونان چھہ "شعر کہ تخلیقی استعمالہ سیتۍ (بنوو رسول میرن) عربی، فارسی رسم الخط تہ خاص کر تمیک نستعلیق طرز کاشرِ زبانۍ ہنز تہذیبی وراثت۔” ٹینگس چھہ یتھنے غیر ادبی معیارن مدنظر شاعرن تھر کھالنس مزہ یوان۔

سوال چھہ یہ زِ کیا رسول میرس برونہہ اوس نا حروف تہجی کٲنسہِ شعرن منز ورتوومت؟

محمود گامی تس برونہہ ونان:

الف قد میون سپد دال

رسول میرس برونہہ ینہ وول سۅچھ کرال چھہ حروف تہجی ین پیٹھ اکھ پورہ وژن ونان، یمیک اکھ بند مثالہ پاٹھۍ پیش چھہ:

خ خودی نشہِ یُس نہ پیوے
د دنیا گوس نالۍ
ذ ذلتس منز سہ پیووے
بوز عربی روویے

رسول میر اوس اکہِ شعری روایتچ تقلید کران یتھ منز حروف تہجی سیتۍ معشوق سندس حسنس تعریف کرنہ ٲسۍ یوان، نستعلیق کتہِ آو اتھ منز؟ میم دہان ما چھہ نستعلیق میم، بلکہ چھہ یہ نسخ میم یعنی عربی زبانۍ ہند میم ییتہ پیٹھہ یہ حروف تہجی ورتاونچ روایت فارسی یس منز آمژ چھہ۔ رسول میر سنزِ شاعری منز یۅس شوخی یا خوش مزاجی (playfulness) چھیہ تمہ کنۍ آو یہ استعمال تس زیادہ بکار۔ رسول میرس برونہہ چھہ حروف تہجی یک ذکر شیخ العالم کران:

کل علم چھے الف لام میم شین

تیلہِ کونہ دمو اسۍ کاشرِ زبانۍ منز عربی فارسی خط مستحکم کرنک اعزاز شیخ العالمس؟

حروف تہجی فارسی شعرچہ روایژ ہندس تقلیدس منز ورتاونس تہ کاشرِ زبانۍ منز یہ نستعلیق خط مستحکم کرنس کس تعلق چھہ؟ سہ کمۍ تہ کر کور کاشرِ کہ خاطرہ کانہہ تہِ رسم خط مستحکم؟ یہ رسم خط اوس کشیرِ منز فارسی یس ستیۍ آمت تہ فارسی لیکھنہ خاطرے اوس ورتاونہ یوان، کاشرۍ قلمی نسخہ تہِ اگر اتھ منز لیکھنہ آے تم آیہ نہ رسول میر سندیو یمو شعرو کنۍ لیکھنہ۔ فارسی کنۍ اوس یہ خط رسول میرس برونہہ کشیر ہندس تہذیبی وراثتس منز شامل سپدمت۔

رندِ بال درایس

رندِ بال درایس، اندِ کیا نیایس
ہندِ روس چھون چھم پھوت یے لولو*
انور وار

اتھ شعرس پیٹھ کمینٹ کران چھہ مظفر عازم ونان ز اتھ منز چھہ "اشارہ زِ کل زندگی کٔرتھ (رندِ نیرتھ) یہ حاصل تہِ چھہ نہ پانہ سے ٹارِ کھسان۔”

یہ چھہ امیک استعاراتی یا زیرین معنی یُس شعرس اندر لفظی طور موجود چھہ نہ بلکہ چھہ امہ موکھہ اتھ عطا کرنہ یوان یا یمن لفظن ہندِ ذریعہ ورگہ پاٹھۍ زاننہ یوان تکیاز اسہ چھہ یتھ کتھہِ پیٹھ سماجی طور اتفاق ز شاعر تہ خاص کر تمہ دورکۍ شاعر یمن اسۍ بعضے بلکہ اکثر صوقی شاعر تہ ونان چھہِ، چھہِ نہ وسی پایہ، پامال تہ معمولی کتھن ہند اظہار کران، شعرچ ظاہری صورت ٲسۍ تن زمینی، روح چھس آسمانی۔ انور وار سنز سٲرے شاعری چھیہ امہ دورکین تہ امہ قسمہ کین باقی تمام شاعرن ہندۍ پاٹھۍ زیریں سطحہِ ہنزے شاعری۔ یہ چھیہ امہ رنگہ روحانی شاعری، تکیازِ اتھ منز چھیہ ظاہری صورت بہانہ، مضمر معنی یعنی امیک روح اہم۔ بقول مظفر عازم ” یہ وونمت چھہ تمہ سیتۍ چھہ تتھ کن حیس گژھان یہ وننے تھوومت چھہ۔” یہ وننے تھٲوتھ چھہ، سہ چھہ انور وار سنزِ شاعری ہندس سیاقس منز تیوت نون زِ ونۍ متس کن چھہ نہ ظۅنے گژھان۔

میہ یمہ ساعتہ یہ شعر پور یا ییلہ بہ یتھۍ شعر پران چھس، خبر میہ کیازِ امہ کس معمولی معنیس لطف یوان، تہ یہ باسان اگر نہ امیک روزانہ تہ معمولی معنی قایم سپدِ، زیرین معنی کتھہ پاٹھۍ ییہ وجودس؟

شعر چھہ ظاہری طور ونان زِ ہند اننہ کہ بہانہ درایس گرِ، مگر یہ اوس بہانہ۔ واپسی پیٹھ پھوت خالی آسنہ کنۍ رندِ نیرُن تکیازِ پریتھ طرفہ چھیہ اچھی اچھ۔ نیاے چھہ شاعری منز زیادہ تر لولہ نیایی۔ سانس سماجس منز چھہ لول اکھ نیاے، اتھ کیا بنہ؟ اتھ شعرس منز چھیہ بیرونی سطحس پیٹھ سانۍ سماجی کہانی درج، یۅس میانہ خاطرہ تیژے اہم چھیہ ییژاہ اتھ کہانی منز مضمر بیاکھ کنایاتی کہانی چھیہ۔

اسۍ ہیکون نہ ظاہری پاس یکسر نظر انداز کٔرتھ۔

مگر یہ تہ چھیہ حقیقت زِ اگر نہ شاعری اسہِ معمولی پیٹھ کنہِ غیر معمولی سطحس سیتۍ زان کرناوِ، یہ ہیکہِ نہ بڈ شاعری بٔنتھ۔ یہ غیر معمولی سطح ہیکہ لفظی سطح علاوہ بیاکھ سطح ٲستھ، یہ چھہ نہ ضروری ز یہ کیا آسہِ لازما روحانی، فلسفیانہ یا مابعد الطبیعاتی۔

یہ تہِ چھہ اکھ سماجی مفروضہ زِ یۅس شاعری ظاہری سطح علاوہ اکھ زیریں سطح پیدہ کرِ، سۅ چھیہ بٔڈ شاعری۔

* میہ چھہ باسان عازم صابس چھیہ امہ بٲتہ کس دریفس منز غلطی گمژ، یہ ہیکہ مسودہ یا روای ین ہنز غلطی تہِ ٲستھ۔ وزنہ لحاظہ گژھہِ اکوے "لو” آسن، یتھہ پاٹھۍ تمو امہ کس گۅڈنکس شعرس منز دیمت چھہ۔ تمہ پتہ چھکھ پریتھ شعرس "لولو” پتہ کنہ تھوومت یس میانہ خیالہ صحیح چھہ نہ۔

دویمس شعرس منز گژھہِ "ساتہ نیک” بدلہ "ساعت نیک” آسن۔
پانژمس شعرس منز گژھہِ "پھۅلہ ون باغہ دل” بدلہ "پھۅلہ ون باغ دل” آسن۔
یم چھیہ کتابت چہ غلطی۔

رفیق رازن نوو قصیدہ

کینہہ ریتھ برونہہ پیوو میہ امین کامل سندس قصیدس اکھ تفصیلی نوٹ لیکھن تکیازِ تتھ متعلق لیکھنہ آمتس اکس مضمونس منز اوس تمیک معنہِ مطلبے غلط سمجھنہ آمت۔ کاشرس منز چھہِ نہ قصیدہ لیکھنہ آمتۍ تہ نہ چھہ سون دور قصیدن ہند دور۔ بقول شفیع شوق تسندس ادبک تواریخس منز چھہ ترجمن ہند ذکر یمن منز بوصیری سند البردہ خاص طور اہم چھہ۔ یمو علاوہ چھہِ رسا جاودانی، امین کامل، رفیق رازن (خبر بییہ تہِ ما آسہِ کٲنسہِ ) اکھ اکھ قصیدہ لیوکھمت۔  

کامل سند قصیدہ چھہ کم و بیش عربی قصیدہ چہ تنظیمہِ ہنز پابندی کران۔ نوۍ مہ صدی منز چھہ ابن قطیبہ "کتاب الشعر والشعرا” ہس منز ونان زِ قصیدہ چھہ ترین حصن پیٹھ مشتمل آسان۔ نصیب، تخلص،تہ ٲخری حصہ یتھ منز فخر یا ہجو یا حکمت آسان چھیہ۔ اسۍ چھہ یم تریشوے عناصر کاملنس قصیدس منز وچھان۔

مۅغلن چھیہ پننۍ ژھاے بہت دۅن چشمن (نصیب)
فن ہاوہ تہ کیا ہاوہ یتھس وقتس ون (تخلص)
شاداب یہ ریشۍ وٲر تہ یم میانۍ سخن (فخر)

کاملنس قصیدس مقابلہ چھہ رفیق رازن بہترین قصیدہ تمۍ سنزِ گۅڈنچہ شعرہ سۅمبرنہ منز درج۔ یہ قصیدہ چھہ امۍ بحضور شیخ العالم لیوکھمت۔ اتھ قصیدس پتہ کنہِ چھہ کامل سنز افکار نظمہ ہند آہنگ الغابہ کنن گژھان، مگر یہ قصیدہ چھہ راز سندِ طرز اداہک اکھ ممتاز تہ بہترین نمونہ۔ میانہ خیالہ چھیہ کامل سند "قصیدہ” تہ راز سند” بحضور شیخ العالم” کاشرِ شاعری ہنزہ زہ اہم نظمہ یم یمن دۅن شاعرن ہندِ تخلیقی قوتکۍ نمونہ چھہِ تہ یمن دۅشونی شاعرن ہنزِ شاعری تہِ واریاہس حدس تام کلہم پاٹھۍ الگ کڈنس منز  مدد کٔرتھ ہیکن۔

بلۍ اچھرہ گیندن میون چھہ اچھرن پھرۍ پھہہ
ژھور میلہِ قلم میون چھہ معنی ورقن
گرمیوس تہ ژلۍ مصلحتن نیرتھ چل
نرمیوس تہ لگۍ ڈیر وتن پیٹھ سخنن
ژھۅکہِ میانۍ فکر روسۍ کچن ڈلہِ رفتار
تھکہِ میانۍ نظر، زون اچھن لگہِ زونن
چھس کنگہ دزاں پانہ تہ پاواں شہلتھ
چھس واوہ ہراں پانہ براں گل ہلمن
یا یکھ تہ وچھکھ میانہِ کلامک ون چھپھ
یا یکھ تہ ژھنڈکھ میانہِ خیالکۍ دٔدون

(قصیدہ، امین کامل)

یا چھی میہ تمے خواب اچھن لارۍ ونیک تام
یاچھس بہ ممت یُتھ یہ جنت گوو میہ عطا ہیو
کژتام اچھر چھم زِ یمن چونہِ جراں چھس
نورٲنۍ علمدارہ میہ باوُن چھہ مدعا ہیو
یا میانۍ کشیرے چھیہ میہ کژ سنگ بنیمژ
یا چھس بہ ظہرۍ روٹہ گومت نیول ہوا ہیو
تھووکھے نہ میہ کن گوش یوتاں ہکۍ تہِ ژھوکییم
وچھہس نہ یوتاں گردِ شروپس وتھرہ صدا ہیو

(بحضور شیخ العالم، رفیق راز)

 ییتہ کامل سندین شعرن منز جلال تہ خۅد اعتمادی چھیہ، تتہ چھیہ راز سندین شعرن منز عاجزی تہ طلب۔ میہ باسان کامل سنزِ شاعری منز چھیہ گرمی تہ راز سنزِ شاعری منز نرمی۔ کامل سنزِ شاعری منز چھہ بہ اہم تہ ژہ چھہ امہ کُے  پرتو، راز سنز شاعری چھیہ برعکس، بہ چھہ ژہ ہک پرتو۔ کامل سند قصیدہ چھہ اکھ خشمہ ہژ شکایت، راز سند بحضور شیخ العالم چھہ اکھ مظلوم آلو۔ کامل سنزِ شکایژ منز چھہ خیر تہ شرک حوالہ، راز سندس آلو منز چھیہ داد تہ بدادچ روداد ۔ دۅشوے شاعر چھہِ اکثر تضاد پیش کران۔ کامل سند تضاد چھہ تکمیلی، راز سند تضاد چھہ تخالفی۔

راز سند  بیاکھ قصیدہ "درمدح وجود” سپد میہ حال حالے مصنف سندِ طرفہ دستیاب۔ قصیدہ چھہ پیش:

قصیدہ در مدح وجود

 رفیق راز

جیرہ ہیو آو سوکوتس وۅں پھرس میٲنس تل
ناگہاں از تہِ ہیوتن روتلہِ وہراون گل
بر زباں چھے میہ شب و روز دعاٖے سیفی
تابعیا بوز ستتھ ساس پیٹھی چھم موکل
تھود تہ بوڈ یوت چھہ بس فیضِ دعاٖے سیفی
تی سپد یی میہ وونم گوو نہ زنہے ادلہ بدل
چھس بہ لب بستہ سخن چھس نہ کراں مصلحتا
یی وناں چھس تہ گژھاں تی چھہ، زباں چھیم کرتل
سلطنت میانہ سکوتچ چھیہ حدو روس تہ انیکھ
اتھۍ اندر گیر گمتۍ اکھ یہ ابد بییہ ہہ ازل
میون قالینہ یہ میژ، تحت سلیماں تہِ کتھا
چھس بہ سلطان سکوتک تہ کھڑا چھِم موکل
میون پِٹھ چھس تہ یہ میژ باج ہیواں اسمانس
میانہ بیمے چھہِ تہہ آب کھٹتھ دشت و جبل
منتظر جن تہ ملک کیتۍ اشارس میٲنس
میون حکمے چھہ شب و روز اناںیم بعمل
میون دستخط نہ یوتاں مِسلہِ پیٹھن سپدِ لگے
در جہاں یی نہ کہنی کٲم توتاں رو بہ عمل
آسہِ بے وونت سمندر تہ کُنُے دام کڈس
آسہِ صحرا تہ کرن غیب یمن پادن تل
اوبرہ لونگ آسہِ گُرکۍ پاٹھۍ کرس زین اتی
وزملا آسہِ اتھن کیتھ بہ تُلن کمچہ بدل
پٲز اسمانۍ وپھاں آسہِ کرس گردنہِ رز
بے وفا دراو اگر جن تہ کرس ہٹۍ ہانکل
نون اگر باوہ تہ برپا چھیہ قیامت سپداں
نون اگر نیرہ تہ ٲنن چھیہ گژھاں عقلہ بقل
سونتھ یی لارِ ہوتُے ناد اگر ہے لایس
یتھ کُلس تل بہ قدم تھاوہ پھلے نیریس جل
گوس ناراض تہ موسم تہِ گژھن بے تاثیر
گوو نہ منشا میہ اگر نیرِ نہ کلۍ شاخن پھل
گلشنس منز چھیہ کراں میون ذکر شاخ بہ شاخ
گیت میانی چھیہ گیواں ماچھ گنس منز یہ نحل
لوگ یمن میانہ اشیک سگ تہ لوبک یوت جہار
تاپہ کراین نہ کہنے جاٖے تمن بونین تل
چھاوہ یود ڈاے اچھر کورہ صفحس، تیمبرِ وۅتھن
شل تہ پل آب گژھن ہاوہ اگر باوژ بل
تاحشر روزِ صحیح ، لیکھہ اگر حرفِ غلط
میون اسلوب جدا میون چھہ انداز نیرل
کاکد اسمان بنی میانۍ اچھر ہے جرہہس
سنکھ اچھرن تہ یہ بتراتھ ژیہ باسی دلدل
تراوہ یود زلف پریشاں بہ اویزاں لفظن
دۅہلہِ کھین دوکھہ تہ پرواز کرن راتہ مۅغل
کم سخن ور چھِہ یواں رٹنہِ میہ نش اچھرہ زکات
ڈیڈِ تل میانہِ گداگر چھِہ صمد میر تہ لل
چھکھ پریشان سیٹھا بوز یہ سر تازہ غزل
در جہاں مسلہ چھہ کُس؟ نیرِ نہ یتھ کانہہ رت حل
کھۅر پکاں رودۍ، یوتامت نہ لگے گوکھ وتُن
مۅل کھساں رود، یوتامت نہ سۅنس گیہ سرتل
کانہہ اگر ٹھک چھہ کراں زورہ پہن دروازس
شورِ محشر چھیہ تلاں پرانہِ زمانچ ہانکل
پانہ سے سیتۍ سخن کر یہ عبادت چھیہ عظیم
پانہ سے سیتۍ شبس روز کراں جنگ و جدل
یم چھیہ کنکریٹ وۅں گوو نیج یوتامت نہ پھٹیکھ
بلبلا یی نہ کہنے پچنہِ یمن دارین تل
ژانگۍ لرزییہ لکو دوپ زِ سحر ووت قریب
کینہہ دپاں واوہ لہر ٲس نژاں شاخن تل
نے کڈِن شاخ نہ برجستہ پھلتھ آو یُہس
یا چھہ ہوکھمت یہ کُلے یا چھہ میہ ہیو اندرہ ہمل
یاد کورمکھ میہ سیٹھا داغ دلکۍ ژلۍ نہ مگر
رود پیوو شرانہِ مگر ووتھ نہ یمن وتھرن مل
یم چھ کینہہ راز میہ کرۍ فاش یمن شعر مہ ون
یم چھ کینہہ لعل کھٹتھ ٲسۍ ہتن پردن تل
ٲخرس منزلِ مقصود طوافک چھہ فنا
روزۍ تن کوت نژاں روزِ یہ بدمست بتل
ٲخرس دی یہ زمیں تیژ دنن ، لرزِ بدن
تھدۍ تہ بڈۍ بام پتھر لاینہ ین براندن تل
چھس نہ پانس تہ گژھاں نظرِ ژیہ کیا ونۍ بہ دمے
چھس بہ فی الحال کھٹتھ پانہ ستن سیندرن تل
عالمس پھیرِ نووُے زو تہ وۅتھیس وترہ بنیل
جاہلس میون عشق میون جنوں باسہِ جہل
تروو گانٹن تہ گریدن لوو بدن ٹکرہ کٔرتھ
چھوو ژھوپ دوپ تہ یہ وٲناکھ رحک گون جنگل
تیتھ شہنشہ بہ یمس زیر نگیں ملک خدا
تیتھ فقیرا بہ میسر نہ یمس ہاکھ وۅپل
وٹھ دزاں چھم تہ سرابس چھہِ وۅتھاں آبہ ملر
سیکھ دزاں آسہِ تہ باساں میہ پدین تل مخمل
تارکھ افتاب تہ مہتاب چھہِ اعراب فقط
میون مصحف چھہ یہ اسمان زمیں میانۍ رحل
میانہِ کوچے چھہ لباں لوکھ خزانن ہند پے
میانۍ دریوزہ گرے درایہ پتو اہل دول
کھۅر چھِہ کھۅربانہ ورٲیی تہِ وتن کنڈۍ چھِہ ؤوِتھ
آو فرمان متس دراو بہ اندازِ رمل
از قصیدا یہ لیکھن اوس میہ در مدحِ وجود
نظمہِ نزدیک اوے پیوو میہ انُن صنفِ غزل

 

یہ گژھہِ یاد تھاوُن کنہِ ساعتہ ہیکہِ اکھ زیوٹھ غزل تہِ قصیدچ شکل رٔٹتھ تہ اکھ قصیدہ تہِ ہیکہِ زیوٹھ غزل بٔنتھ۔ رفیق راز  چھہ تمن کینژنے شاعرن منز یمن زبردست شعرگو ؤنتھ ہیکو، شعر گو مطلب یم اکۍ سے (ردیف) قافیس منز  درجن واد شعر ؤنتھ ہیکن۔ کاشرۍ شاعر چھہِ اکثر اکھ زہ قدم کڈتھے فارمہ رنگۍ تہِ تہ فکری طور تہِ ژھۅکان۔ یہ قصیدہ چھہ بحضور شیخ العالم قصیدکۍ پاٹھۍ تخلیقی وفورچ اکھ زبردست مثال۔

قصیدس منز چھہ راز تیتھ متن تخلیق کران یُس نہ شاعری علاوہ بییہ کانہہ چیز ہیکہِ ٲستھ۔ آہنگ، لفظہ ورتاو،  پیکر تراشی، علامتی مفہوم  ہیکن کنہِ تہِ متنس شعرک درجہ دتھ۔ اتھ منز چھیہ زبانۍ ہنز متاثر کن روانی، استعاراتی اہمیت سیتۍ مملو پیکرن ہنز تخلیقی قوت ظاہر۔ راز سنزِ شاعری ہند سہ پہلو یتھ سریت  تہ حیرت وننہ یوان چھہ یا میانین لقظن منز معجزاتی تجربہ چھہِ یتھ قصیدس منز غالب۔ راز سنزِ شاعری ہندِ حوالہ اتھ قصیدس منز غیر متوقع جلال چھہ دراصل معجزاتی تجربن ہنرِ  پیکر تراشی ہند نتیجہ، یہ چیز چھہ اتھ کامل سنزِ شاعری تہ خاص کر قصیدہ کہ جلالی صورت حال نش الگ کڈان۔ راز سند نفس مضمون چھہ اکثر صورتن منز امی پیکر تراشی ہندِ پونسک دویم پاس۔ یم معجزاتی تجربہ چھہ قصن، داستانن، معجزن، جود ویی منظرن ہند ماحول یا یمن ہندۍ اشارہ قایم کرنہ سیتۍ وجودس منز یوان۔

راز سند یہ قصیدہ چھہ انسانی وجود کس تعریفس منز تہ انسان سندِ متحیر کرن وٲلہِ قوتک تہ امکانن ہند شعری اظہار۔ یہ قوت چھیہ دعاے سیفی کنۍ  یتھ متعلق واریاہ شارح بیان کران چھہ  زِ یہ پرنہ سیتۍ چھہ عجایباتن ہند ظہور سپدان تہ اتھ چھہ حیرت انگیز اثر۔ مصنف چھہ قصیدہ کس اتھ  طلسماتی ماحولس فایدہ تُلتھ  غزل تلنہ برونہہ پننین شعری قوتن تہ امکاناتن ہندس موضوعس کن تہِ پھیران۔ اتھ قصیدس چھہ کامل سندس قصیدس سیتۍ اکھ دلچسپ ہشر یہ زِ دۅشونی منز چھہِ روحانی حوالہ میلان۔ ییتہ راز سندس قصیدس منز دعاے سیفی کین روحانی قوتن ہنز کتھ چھیہ، کامل سندس قصیدس منز چھہ گۅڈنکۍ سے شعرس منز یہ روحانی حوالہ سورة البقرة  کس آیتس کن اشارہ ۔ مۅغلن چھیہ پننۍ ژھانپھ بہت دۅن چشمن۔  تمہ پتہ چھہ یہ روحانی اشارہ  قصیدس منز وسجار لبان۔ امہ سورہ شریفچ تھیم "منکر حق” چھیہ پورہ قصیدک موضوع بنان ۔ دۅشوے مصنف چھہِ روحانی صورت حالس پننس فنس سیتۍ واٹھ دوان۔