رندِ بال درایس

رندِ بال درایس، اندِ کیا نیایس
ہندِ روس چھون چھم پھوت یے لولو*
انور وار

اتھ شعرس پیٹھ کمینٹ کران چھہ مظفر عازم ونان ز اتھ منز چھہ "اشارہ زِ کل زندگی کٔرتھ (رندِ نیرتھ) یہ حاصل تہِ چھہ نہ پانہ سے ٹارِ کھسان۔”

یہ چھہ امیک استعاراتی یا زیرین معنی یُس شعرس اندر لفظی طور موجود چھہ نہ بلکہ چھہ امہ موکھہ اتھ عطا کرنہ یوان یا یمن لفظن ہندِ ذریعہ ورگہ پاٹھۍ زاننہ یوان تکیاز اسہ چھہ یتھ کتھہِ پیٹھ سماجی طور اتفاق ز شاعر تہ خاص کر تمہ دورکۍ شاعر یمن اسۍ بعضے بلکہ اکثر صوقی شاعر تہ ونان چھہِ، چھہِ نہ وسی پایہ، پامال تہ معمولی کتھن ہند اظہار کران، شعرچ ظاہری صورت ٲسۍ تن زمینی، روح چھس آسمانی۔ انور وار سنز سٲرے شاعری چھیہ امہ دورکین تہ امہ قسمہ کین باقی تمام شاعرن ہندۍ پاٹھۍ زیریں سطحہِ ہنزے شاعری۔ یہ چھیہ امہ رنگہ روحانی شاعری، تکیازِ اتھ منز چھیہ ظاہری صورت بہانہ، مضمر معنی یعنی امیک روح اہم۔ بقول مظفر عازم ” یہ وونمت چھہ تمہ سیتۍ چھہ تتھ کن حیس گژھان یہ وننے تھوومت چھہ۔” یہ وننے تھٲوتھ چھہ، سہ چھہ انور وار سنزِ شاعری ہندس سیاقس منز تیوت نون زِ ونۍ متس کن چھہ نہ ظۅنے گژھان۔

میہ یمہ ساعتہ یہ شعر پور یا ییلہ بہ یتھۍ شعر پران چھس، خبر میہ کیازِ امہ کس معمولی معنیس لطف یوان، تہ یہ باسان اگر نہ امیک روزانہ تہ معمولی معنی قایم سپدِ، زیرین معنی کتھہ پاٹھۍ ییہ وجودس؟

شعر چھہ ظاہری طور ونان زِ ہند اننہ کہ بہانہ درایس گرِ، مگر یہ اوس بہانہ۔ واپسی پیٹھ پھوت خالی آسنہ کنۍ رندِ نیرُن تکیازِ پریتھ طرفہ چھیہ اچھی اچھ۔ نیاے چھہ شاعری منز زیادہ تر لولہ نیایی۔ سانس سماجس منز چھہ لول اکھ نیاے، اتھ کیا بنہ؟ اتھ شعرس منز چھیہ بیرونی سطحس پیٹھ سانۍ سماجی کہانی درج، یۅس میانہ خاطرہ تیژے اہم چھیہ ییژاہ اتھ کہانی منز مضمر بیاکھ کنایاتی کہانی چھیہ۔

اسۍ ہیکون نہ ظاہری پاس یکسر نظر انداز کٔرتھ۔

مگر یہ تہ چھیہ حقیقت زِ اگر نہ شاعری اسہِ معمولی پیٹھ کنہِ غیر معمولی سطحس سیتۍ زان کرناوِ، یہ ہیکہِ نہ بڈ شاعری بٔنتھ۔ یہ غیر معمولی سطح ہیکہ لفظی سطح علاوہ بیاکھ سطح ٲستھ، یہ چھہ نہ ضروری ز یہ کیا آسہِ لازما روحانی، فلسفیانہ یا مابعد الطبیعاتی۔

یہ تہِ چھہ اکھ سماجی مفروضہ زِ یۅس شاعری ظاہری سطح علاوہ اکھ زیریں سطح پیدہ کرِ، سۅ چھیہ بٔڈ شاعری۔

* میہ چھہ باسان عازم صابس چھیہ امہ بٲتہ کس دریفس منز غلطی گمژ، یہ ہیکہ مسودہ یا روای ین ہنز غلطی تہِ ٲستھ۔ وزنہ لحاظہ گژھہِ اکوے "لو” آسن، یتھہ پاٹھۍ تمو امہ کس گۅڈنکس شعرس منز دیمت چھہ۔ تمہ پتہ چھکھ پریتھ شعرس "لولو” پتہ کنہ تھوومت یس میانہ خیالہ صحیح چھہ نہ۔

دویمس شعرس منز گژھہِ "ساتہ نیک” بدلہ "ساعت نیک” آسن۔
پانژمس شعرس منز گژھہِ "پھۅلہ ون باغہ دل” بدلہ "پھۅلہ ون باغ دل” آسن۔
یم چھیہ کتابت چہ غلطی۔

رفیق رازن نوو قصیدہ

کینہہ ریتھ برونہہ پیوو میہ امین کامل سندس قصیدس اکھ تفصیلی نوٹ لیکھن تکیازِ تتھ متعلق لیکھنہ آمتس اکس مضمونس منز اوس تمیک معنہِ مطلبے غلط سمجھنہ آمت۔ کاشرس منز چھہِ نہ قصیدہ لیکھنہ آمتۍ تہ نہ چھہ سون دور قصیدن ہند دور۔ بقول شفیع شوق تسندس ادبک تواریخس منز چھہ ترجمن ہند ذکر یمن منز بوصیری سند البردہ خاص طور اہم چھہ۔ یمو علاوہ چھہِ رسا جاودانی، امین کامل، رفیق رازن (خبر بییہ تہِ ما آسہِ کٲنسہِ ) اکھ اکھ قصیدہ لیوکھمت۔  

کامل سند قصیدہ چھہ کم و بیش عربی قصیدہ چہ تنظیمہِ ہنز پابندی کران۔ نوۍ مہ صدی منز چھہ ابن قطیبہ "کتاب الشعر والشعرا” ہس منز ونان زِ قصیدہ چھہ ترین حصن پیٹھ مشتمل آسان۔ نصیب، تخلص،تہ ٲخری حصہ یتھ منز فخر یا ہجو یا حکمت آسان چھیہ۔ اسۍ چھہ یم تریشوے عناصر کاملنس قصیدس منز وچھان۔

مۅغلن چھیہ پننۍ ژھاے بہت دۅن چشمن (نصیب)
فن ہاوہ تہ کیا ہاوہ یتھس وقتس ون (تخلص)
شاداب یہ ریشۍ وٲر تہ یم میانۍ سخن (فخر)

کاملنس قصیدس مقابلہ چھہ رفیق رازن بہترین قصیدہ تمۍ سنزِ گۅڈنچہ شعرہ سۅمبرنہ منز درج۔ یہ قصیدہ چھہ امۍ بحضور شیخ العالم لیوکھمت۔ اتھ قصیدس پتہ کنہِ چھہ کامل سنز افکار نظمہ ہند آہنگ الغابہ کنن گژھان، مگر یہ قصیدہ چھہ راز سندِ طرز اداہک اکھ ممتاز تہ بہترین نمونہ۔ میانہ خیالہ چھیہ کامل سند "قصیدہ” تہ راز سند” بحضور شیخ العالم” کاشرِ شاعری ہنزہ زہ اہم نظمہ یم یمن دۅن شاعرن ہندِ تخلیقی قوتکۍ نمونہ چھہِ تہ یمن دۅشونی شاعرن ہنزِ شاعری تہِ واریاہس حدس تام کلہم پاٹھۍ الگ کڈنس منز  مدد کٔرتھ ہیکن۔

بلۍ اچھرہ گیندن میون چھہ اچھرن پھرۍ پھہہ
ژھور میلہِ قلم میون چھہ معنی ورقن
گرمیوس تہ ژلۍ مصلحتن نیرتھ چل
نرمیوس تہ لگۍ ڈیر وتن پیٹھ سخنن
ژھۅکہِ میانۍ فکر روسۍ کچن ڈلہِ رفتار
تھکہِ میانۍ نظر، زون اچھن لگہِ زونن
چھس کنگہ دزاں پانہ تہ پاواں شہلتھ
چھس واوہ ہراں پانہ براں گل ہلمن
یا یکھ تہ وچھکھ میانہِ کلامک ون چھپھ
یا یکھ تہ ژھنڈکھ میانہِ خیالکۍ دٔدون

(قصیدہ، امین کامل)

یا چھی میہ تمے خواب اچھن لارۍ ونیک تام
یاچھس بہ ممت یُتھ یہ جنت گوو میہ عطا ہیو
کژتام اچھر چھم زِ یمن چونہِ جراں چھس
نورٲنۍ علمدارہ میہ باوُن چھہ مدعا ہیو
یا میانۍ کشیرے چھیہ میہ کژ سنگ بنیمژ
یا چھس بہ ظہرۍ روٹہ گومت نیول ہوا ہیو
تھووکھے نہ میہ کن گوش یوتاں ہکۍ تہِ ژھوکییم
وچھہس نہ یوتاں گردِ شروپس وتھرہ صدا ہیو

(بحضور شیخ العالم، رفیق راز)

 ییتہ کامل سندین شعرن منز جلال تہ خۅد اعتمادی چھیہ، تتہ چھیہ راز سندین شعرن منز عاجزی تہ طلب۔ میہ باسان کامل سنزِ شاعری منز چھیہ گرمی تہ راز سنزِ شاعری منز نرمی۔ کامل سنزِ شاعری منز چھہ بہ اہم تہ ژہ چھہ امہ کُے  پرتو، راز سنز شاعری چھیہ برعکس، بہ چھہ ژہ ہک پرتو۔ کامل سند قصیدہ چھہ اکھ خشمہ ہژ شکایت، راز سند بحضور شیخ العالم چھہ اکھ مظلوم آلو۔ کامل سنزِ شکایژ منز چھہ خیر تہ شرک حوالہ، راز سندس آلو منز چھیہ داد تہ بدادچ روداد ۔ دۅشوے شاعر چھہِ اکثر تضاد پیش کران۔ کامل سند تضاد چھہ تکمیلی، راز سند تضاد چھہ تخالفی۔

راز سند  بیاکھ قصیدہ "درمدح وجود” سپد میہ حال حالے مصنف سندِ طرفہ دستیاب۔ قصیدہ چھہ پیش:

قصیدہ در مدح وجود

 رفیق راز

جیرہ ہیو آو سوکوتس وۅں پھرس میٲنس تل
ناگہاں از تہِ ہیوتن روتلہِ وہراون گل
بر زباں چھے میہ شب و روز دعاٖے سیفی
تابعیا بوز ستتھ ساس پیٹھی چھم موکل
تھود تہ بوڈ یوت چھہ بس فیضِ دعاٖے سیفی
تی سپد یی میہ وونم گوو نہ زنہے ادلہ بدل
چھس بہ لب بستہ سخن چھس نہ کراں مصلحتا
یی وناں چھس تہ گژھاں تی چھہ، زباں چھیم کرتل
سلطنت میانہ سکوتچ چھیہ حدو روس تہ انیکھ
اتھۍ اندر گیر گمتۍ اکھ یہ ابد بییہ ہہ ازل
میون قالینہ یہ میژ، تحت سلیماں تہِ کتھا
چھس بہ سلطان سکوتک تہ کھڑا چھِم موکل
میون پِٹھ چھس تہ یہ میژ باج ہیواں اسمانس
میانہ بیمے چھہِ تہہ آب کھٹتھ دشت و جبل
منتظر جن تہ ملک کیتۍ اشارس میٲنس
میون حکمے چھہ شب و روز اناںیم بعمل
میون دستخط نہ یوتاں مِسلہِ پیٹھن سپدِ لگے
در جہاں یی نہ کہنی کٲم توتاں رو بہ عمل
آسہِ بے وونت سمندر تہ کُنُے دام کڈس
آسہِ صحرا تہ کرن غیب یمن پادن تل
اوبرہ لونگ آسہِ گُرکۍ پاٹھۍ کرس زین اتی
وزملا آسہِ اتھن کیتھ بہ تُلن کمچہ بدل
پٲز اسمانۍ وپھاں آسہِ کرس گردنہِ رز
بے وفا دراو اگر جن تہ کرس ہٹۍ ہانکل
نون اگر باوہ تہ برپا چھیہ قیامت سپداں
نون اگر نیرہ تہ ٲنن چھیہ گژھاں عقلہ بقل
سونتھ یی لارِ ہوتُے ناد اگر ہے لایس
یتھ کُلس تل بہ قدم تھاوہ پھلے نیریس جل
گوس ناراض تہ موسم تہِ گژھن بے تاثیر
گوو نہ منشا میہ اگر نیرِ نہ کلۍ شاخن پھل
گلشنس منز چھیہ کراں میون ذکر شاخ بہ شاخ
گیت میانی چھیہ گیواں ماچھ گنس منز یہ نحل
لوگ یمن میانہ اشیک سگ تہ لوبک یوت جہار
تاپہ کراین نہ کہنے جاٖے تمن بونین تل
چھاوہ یود ڈاے اچھر کورہ صفحس، تیمبرِ وۅتھن
شل تہ پل آب گژھن ہاوہ اگر باوژ بل
تاحشر روزِ صحیح ، لیکھہ اگر حرفِ غلط
میون اسلوب جدا میون چھہ انداز نیرل
کاکد اسمان بنی میانۍ اچھر ہے جرہہس
سنکھ اچھرن تہ یہ بتراتھ ژیہ باسی دلدل
تراوہ یود زلف پریشاں بہ اویزاں لفظن
دۅہلہِ کھین دوکھہ تہ پرواز کرن راتہ مۅغل
کم سخن ور چھِہ یواں رٹنہِ میہ نش اچھرہ زکات
ڈیڈِ تل میانہِ گداگر چھِہ صمد میر تہ لل
چھکھ پریشان سیٹھا بوز یہ سر تازہ غزل
در جہاں مسلہ چھہ کُس؟ نیرِ نہ یتھ کانہہ رت حل
کھۅر پکاں رودۍ، یوتامت نہ لگے گوکھ وتُن
مۅل کھساں رود، یوتامت نہ سۅنس گیہ سرتل
کانہہ اگر ٹھک چھہ کراں زورہ پہن دروازس
شورِ محشر چھیہ تلاں پرانہِ زمانچ ہانکل
پانہ سے سیتۍ سخن کر یہ عبادت چھیہ عظیم
پانہ سے سیتۍ شبس روز کراں جنگ و جدل
یم چھیہ کنکریٹ وۅں گوو نیج یوتامت نہ پھٹیکھ
بلبلا یی نہ کہنے پچنہِ یمن دارین تل
ژانگۍ لرزییہ لکو دوپ زِ سحر ووت قریب
کینہہ دپاں واوہ لہر ٲس نژاں شاخن تل
نے کڈِن شاخ نہ برجستہ پھلتھ آو یُہس
یا چھہ ہوکھمت یہ کُلے یا چھہ میہ ہیو اندرہ ہمل
یاد کورمکھ میہ سیٹھا داغ دلکۍ ژلۍ نہ مگر
رود پیوو شرانہِ مگر ووتھ نہ یمن وتھرن مل
یم چھ کینہہ راز میہ کرۍ فاش یمن شعر مہ ون
یم چھ کینہہ لعل کھٹتھ ٲسۍ ہتن پردن تل
ٲخرس منزلِ مقصود طوافک چھہ فنا
روزۍ تن کوت نژاں روزِ یہ بدمست بتل
ٲخرس دی یہ زمیں تیژ دنن ، لرزِ بدن
تھدۍ تہ بڈۍ بام پتھر لاینہ ین براندن تل
چھس نہ پانس تہ گژھاں نظرِ ژیہ کیا ونۍ بہ دمے
چھس بہ فی الحال کھٹتھ پانہ ستن سیندرن تل
عالمس پھیرِ نووُے زو تہ وۅتھیس وترہ بنیل
جاہلس میون عشق میون جنوں باسہِ جہل
تروو گانٹن تہ گریدن لوو بدن ٹکرہ کٔرتھ
چھوو ژھوپ دوپ تہ یہ وٲناکھ رحک گون جنگل
تیتھ شہنشہ بہ یمس زیر نگیں ملک خدا
تیتھ فقیرا بہ میسر نہ یمس ہاکھ وۅپل
وٹھ دزاں چھم تہ سرابس چھہِ وۅتھاں آبہ ملر
سیکھ دزاں آسہِ تہ باساں میہ پدین تل مخمل
تارکھ افتاب تہ مہتاب چھہِ اعراب فقط
میون مصحف چھہ یہ اسمان زمیں میانۍ رحل
میانہِ کوچے چھہ لباں لوکھ خزانن ہند پے
میانۍ دریوزہ گرے درایہ پتو اہل دول
کھۅر چھِہ کھۅربانہ ورٲیی تہِ وتن کنڈۍ چھِہ ؤوِتھ
آو فرمان متس دراو بہ اندازِ رمل
از قصیدا یہ لیکھن اوس میہ در مدحِ وجود
نظمہِ نزدیک اوے پیوو میہ انُن صنفِ غزل

 

یہ گژھہِ یاد تھاوُن کنہِ ساعتہ ہیکہِ اکھ زیوٹھ غزل تہِ قصیدچ شکل رٔٹتھ تہ اکھ قصیدہ تہِ ہیکہِ زیوٹھ غزل بٔنتھ۔ رفیق راز  چھہ تمن کینژنے شاعرن منز یمن زبردست شعرگو ؤنتھ ہیکو، شعر گو مطلب یم اکۍ سے (ردیف) قافیس منز  درجن واد شعر ؤنتھ ہیکن۔ کاشرۍ شاعر چھہِ اکثر اکھ زہ قدم کڈتھے فارمہ رنگۍ تہِ تہ فکری طور تہِ ژھۅکان۔ یہ قصیدہ چھہ بحضور شیخ العالم قصیدکۍ پاٹھۍ تخلیقی وفورچ اکھ زبردست مثال۔

قصیدس منز چھہ راز تیتھ متن تخلیق کران یُس نہ شاعری علاوہ بییہ کانہہ چیز ہیکہِ ٲستھ۔ آہنگ، لفظہ ورتاو،  پیکر تراشی، علامتی مفہوم  ہیکن کنہِ تہِ متنس شعرک درجہ دتھ۔ اتھ منز چھیہ زبانۍ ہنز متاثر کن روانی، استعاراتی اہمیت سیتۍ مملو پیکرن ہنز تخلیقی قوت ظاہر۔ راز سنزِ شاعری ہند سہ پہلو یتھ سریت  تہ حیرت وننہ یوان چھہ یا میانین لقظن منز معجزاتی تجربہ چھہِ یتھ قصیدس منز غالب۔ راز سنزِ شاعری ہندِ حوالہ اتھ قصیدس منز غیر متوقع جلال چھہ دراصل معجزاتی تجربن ہنرِ  پیکر تراشی ہند نتیجہ، یہ چیز چھہ اتھ کامل سنزِ شاعری تہ خاص کر قصیدہ کہ جلالی صورت حال نش الگ کڈان۔ راز سند نفس مضمون چھہ اکثر صورتن منز امی پیکر تراشی ہندِ پونسک دویم پاس۔ یم معجزاتی تجربہ چھہ قصن، داستانن، معجزن، جود ویی منظرن ہند ماحول یا یمن ہندۍ اشارہ قایم کرنہ سیتۍ وجودس منز یوان۔

راز سند یہ قصیدہ چھہ انسانی وجود کس تعریفس منز تہ انسان سندِ متحیر کرن وٲلہِ قوتک تہ امکانن ہند شعری اظہار۔ یہ قوت چھیہ دعاے سیفی کنۍ  یتھ متعلق واریاہ شارح بیان کران چھہ  زِ یہ پرنہ سیتۍ چھہ عجایباتن ہند ظہور سپدان تہ اتھ چھہ حیرت انگیز اثر۔ مصنف چھہ قصیدہ کس اتھ  طلسماتی ماحولس فایدہ تُلتھ  غزل تلنہ برونہہ پننین شعری قوتن تہ امکاناتن ہندس موضوعس کن تہِ پھیران۔ اتھ قصیدس چھہ کامل سندس قصیدس سیتۍ اکھ دلچسپ ہشر یہ زِ دۅشونی منز چھہِ روحانی حوالہ میلان۔ ییتہ راز سندس قصیدس منز دعاے سیفی کین روحانی قوتن ہنز کتھ چھیہ، کامل سندس قصیدس منز چھہ گۅڈنکۍ سے شعرس منز یہ روحانی حوالہ سورة البقرة  کس آیتس کن اشارہ ۔ مۅغلن چھیہ پننۍ ژھانپھ بہت دۅن چشمن۔  تمہ پتہ چھہ یہ روحانی اشارہ  قصیدس منز وسجار لبان۔ امہ سورہ شریفچ تھیم "منکر حق” چھیہ پورہ قصیدک موضوع بنان ۔ دۅشوے مصنف چھہِ روحانی صورت حالس پننس فنس سیتۍ واٹھ دوان۔ 

تابانہ چہہ افتابہ مگر ہے قسمت

شیرازہ کس خصوصی شمارہ امین کامل نمبرس منز چھہ پروفیسر مرغوب بانہالی ین، کامل سنزِ قصیدہ نظمہِ ہند رسا جاودانی سندس پیش رو قصیدس سیتۍ اکھ تقابلی مطالعہ پیش کورمت۔ اتھ مطالعس منز یم نتیجہ کامل سندس قصیدس متعلق کڈنہ آمتۍ چھہِ، تمن ہنز تصحیح چھیہ کاشرِ ادبچ یہ شاہکار نظم (بقول محمد یوسف ٹینگ) سمجھنہ خاطرہ ضروری۔

مرغوب چھہ اتھ مختصر تقابلس منز زہ کتھہ برونہہ کن انان، بلکہ چھیہ یمے زہ کتھہ تقابلک مقصد تہِ۔ اکھ یہ زِ رساجاودانی سندۍ قصیدن چھیہ کاملس پنن قصیدہ وننچ تحریک دژمژ۔ دویم یہ زِ ییتہِ پیش رو  قصیدس منز بھدرواہ کہ حسنکۍ تعریف چھہِ، کامل سندس قصیدس منز چھہِ کشیرِ ہندِ حسنکۍ تعریف۔ ییتہِ ہُتھ منز 26 شعر چھہِ، یتھ منز چھہِ 41 شعر تہ امی تناسبہ چھہ اکھ بییہ کس «برونہہ نیران»۔ مرغوب سنزہ یم دۅشوے کتھہ چھیہ اکھ اکس سیتۍ تعلق تھاوان تہ دویم سراسر غلط۔

گۅڈہ تُلو اسۍ دویم کتھ۔ تمی منزہ نیرِ گۅڈنچہ کتھہِ ہند ژھۅژر۔ رسا جاودانی چھہ پننس قصیدس منز بھدرواہ چہ سرزمینہِ ہندِ حسنکۍ، اتہِ کین بسکینن ہنزِ خۅش خلقی تہ اتہِ کہ موسمہ چہ شادابی ہندۍ تعریف کران۔ یہ چھہ مرغوب سندۍ نے لفظن منز «وطن پرستانہ» قصیدہ۔ مگر کامل سندس قصیدس وطن پرستانہ ونن چھہ نہ صحیح۔ یہ دھوکہ چھہ مرغوبس اتھ قصیدس منز کشیر ہنزِ خوبصورتی متعلق کینژن شعرن ہنزِ موجودگی کنۍ لوگمت۔ سہ چھہ اتھ پورہ قصیدس نہ سنیومت تہ نہ چھین پننہ مقصد چہ جلد بازی کنۍ سمجھنچ کوشش کرمژ۔ کامل چھہ نہ کشیرِ قصیدہ لیکھان بلکہ «پننس پانس» یمہ کنۍ یہ قصیدہ پننۍ اکھ الگ اہمیت تھاوان چھہ۔ امہ قصیدک موضوع چھہ امہ کس گۅڈنکۍ سے شعرس منز نون:

تابانہ چھہ افتابہ مگر ہے قسمت
مۅغلن چھیہ پننۍ ژھانپ بہت دۅن چشمن

یعنی کامل سنز تخلیقی شخصیت چھیہ آفتابکۍ پاٹھۍ ادبہ کس آسمانس پیٹھ گاہ ژھٹان مگر افسوس زِ وچھنہ خاطرہ چھیہ نہ اچھ۔ اندۍ پکھۍ چھہِ راتہ مۅغل یمن پننین اچھن ہنز ژھانپھ امہ نظارہ نش محروم تھٲوتھ چھیہ۔ کامل چھہ برونہہ کن پننس پانس حق کس ظہورس سیتۍ مشابہت دتھ تہ وقتہ کین نمرودن پنن پان ژیتس پٲوتھ اتھ خیالس منز خیر وشرک تواریخی، روحانی سرینیر تہ تناظر پیدہ کران۔

گویا قصیدچ شروعات چھیہ یہ زِ خدایس اوس کامل زنمس انن۔ یتھ جایہ سہ زنمس اونن سۅ بنٲون تمس ظاہری حسنہ کنۍ شایان شان۔ امی تعلقہ چھہِ قصیدہ کس گۅڈنکس حصس منز کشیرِ ہندِ مارۍ منزرکۍ 8 شعر آمتۍ۔ کامل چھہ یمن تعریفن ہند وجہ یتھہ پاٹھۍ بیان کران:

ازلے ژیہ کورے مٲنزِ اتھو یمۍ شابش
تس ٲس خبر آسہِ یہ کمۍ سند مسکن 

امہ پتہ چھہ ینہ والین نون (9) شعرن منز  پننۍ تعریف کران ۔ مثلا:

اکھ جلوہ اگر ہاوہ متن ہتھ معشوق
کم اوش پننۍ بھول گژھن نوش لبن

بلۍ اچھرہ گیندن میون چھہ طرحن پھر پھہہ
ژھور میلہِ قلم میون چھہ کیا تاں ورقن

غم میون چھہ گل خندہ بشارت پگہچ
کُس زانہِ بہ کۅس زان کراں چھس حرفن

قصیدس منز چھہ کنہِ حدس تام اکھ ٹریجڈک صورت حالک ہیو ماحول پیدہ گژھان۔ اکھ جلال آور تخلیقی شخصیت، جاے تہِ تس شایان شان مگر وقت – وقت چھہ فن کہ لحاظہ ناموزون، قدر ناشناس۔ قصیدس منز چھہ پننیو تعریفو پتہ شین ستن شعرن منز وقتہ چہ ناموزونیژ ہند بیان۔

افسوس زِ ژھۅژہ کانۍ بنیم سرہنگ
شکرانہ میہ کن دھیان کمے تھوو ہوسن

نٹۍ نغمہ تہ کٹۍ ڈالہ چھہ تہذیبک رنگ
فن ہاوہ تہ کیا ہاوہ یتھس وقتس ون

خۅددار ضمیرن چھہ حکم کرتلہِ شرم
اعلان چھہ شیطان وچھتھ پیون سجدن

وقت سازگار نہ آسنکۍ، بے قدری یا بے توجہی ہنزِ شکایژ ہندۍ حوالہ چھہِ شاعرن نش کھلہِ میلان مگر تواریخی حوالو کنۍ چھیہ کامل سندِ قصیدچ معنی خیزی ہران۔ اتھ منز چھہ کامل بنی نوع آدم سنزِ تخلیقہِ ہندس واقعس کن اشارہ کرتھ کشیرِ ہشہِ مارۍ منزِ  جایہ جنت تہ دنیاہس سیتۍ، پننس پانس ظہور آدمس تہ وقتس شیطان سنزِ چالاکی سیتۍ استعاراتی واٹھ دوان۔ ٲخرس پیٹھ چھہ کامل پننہِ انا پسندی تہ کشیرِ ہنزِ شادابی گواہ بنٲوتھ پننس فنس منز اطمینان تہ بقا لبان:

چھس نار تہ نارس چھیہ نہ پوراں کانہہ ریہہ
چھس آب تہ آبس چھہ نہ دامن ادرن

یوت تام چھہ بترٲژ تہ افتابس سنگ
شاداب یہ ریشۍ وٲر تہ یم میانۍ سخن 

یہ چھیہ مختصر پاٹھۍ امہ قصیدچ تفہیم۔ امہ پتہ چھیہ نہ شکچ کانہہ گنجایش زِ کامل سندس قصیدس چھہ نہ رسا سندس وطن پرستانہ قصیدس سیتۍ کانہہ موضوعی تعلق۔ یمن ہندۍ موضوع چھہِ الگ۔ اکھ چھہ قدرتی نظارن ہنز تصویر کشی تہ بیاکھ قصیدہ کہ معیاری تعریفہ مطابق اکس با اثر شخژہ (کامل) سندۍ گۅن گیوان۔ لہذا چھیہ نہ مرغوب سنز 26 بمقابلہ 41 شعر تہ تمہ تناسبہ یمن قصیدن ہنز مان مان کانہہ مطلب تھاوان۔ وۅں گوو یہ کتھ چھیہ ضرور زِ یمن ہند وزن تہ قافیہ نظام چھہِ کنی۔ اتھ متعلق چھہ کامل ونان «وری واد برونہہ دژ میہ شاید مرزا عارف سندس وننس پیٹھ لال چوک وۅستہ کھار٭ سندس وانس منز رسا سندس مسودس نظر تہ کینہہ تعارفی سطرہ لیچھمس تتۍ نے۔» کامل چھہ مزید لیکھان: «رسا صابنۍ بیاض پران پران گوو امیک یہ مصرعہ میٲنس ذہنس اندر جاے گیر ‹یا یکھ تہ وچھکھ پانہ وناں کتھ جوبن›۔ وقتس سیتۍ گوو میہ مشتھے یہ مصرعہ چھہ کہند۔ کتھ آیہ تہ گیہ۔ مگر امہ پتہ واریاہ وری گژھتھ  ییلہ میہ قصیدہ نظم لیکھنۍ ہیژ یہ مصرعہ آم غیر شعوری طور برونہہ کن تہ بنیوو میانہِ نظمہِ ہندِ قافیہ نظامچ بنیاد۔»

اگر کاملن رسا جاودانی سنزِ دیکھا دیکھی منز قدرتی نظارن ہنز تصویر کشی کٔرتھ کشیرِ ہندس شانس منز قصیدہ وونمت آسہِ ہے، تیلہ بنہِ ہے رسا سند قصیدہ صحیح معنیس منز محرک۔ چونکہ کامل سند قصیدہ چھہ موضوعی طور بالکل مختلف، لہذا چھہ نہ یمن دۅن قصیدن درمیان ہیتی ہشرہ علاوہ کانہہ رشتہ۔ کاملن چھیہ پننہ قصیدہ خاطرہ رسا سندِ قصیدچ زمین تسندین ذہن نشین مصرعن ہندِ حوالہ ورتٲومژ تہ مرغوب بانہالی سندِ طرفہ امچ نشاندہی چھیہ پرن والین ہندِ خاطرہ دۅشونۍ قصیدن متعلق اکھ دلچسپ شیچھ۔ باقی یُس شعر لرِ لور تھٲوتھ یمن ہند تقابل کرنہ آمت چھہ سہ چھہ نہ یمن قصیدن متعلق کانہہ کتھ گاشراوان بلکہ مرغوب سنزِ شعر فہمی شک آور بناوان۔

شعوری طور یا غیر شعوری طور کامل سند پننہ قصیدہ خاطرہ بیۍ سنز زمین (وزن تہ قافیہ) ورتاون چھیہ پریتھ ادبہ چہ، خاص کر مشرقی شعری ادبہ چہ روایژ ہندین حدن منز اکھ عام کتھ۔ زمینن ہند ہیوت دیت چھیہ فارسی، اردو تہ کاشرِ شاعری منز اکھ مسلم حقیقت تہ اکھ مثبت روایت۔ نہ صرف چھیہ اکھ اکۍ سنزہ زمینہ، بلکہ مضمون تہ استعارہ حتی کہ پیکر تہِ یسلہ پاٹھۍ ورتاونہ آمتۍ تہ کالہ پگاہ چھہِ مرغوب سندِ دسۍ تہِ ورتاونہ یوان۔ شاعری ہند یہ موضوعی تہ ہیتی تسلسل چھہ متنن ہندِ حوالہ جاتی نظامک اکھ حصہ۔ یہ حوالہ جاتی نظام چھہ رسومیاتن، شعری ہیتن تہ تجربن/موضوعن ہنز اکھ شعوری تہ غیر شعوری کرۍ ہانکل یمہ سیتۍ ادبچ نہ صرف تخلیق بلکہ تفہیم تہِ ممکن سپدان چھیہ۔ امہ پوت منظرہ پتہ چھیہ مرغوب سنز یہ گراو زِ «ادبی دیانتک تقاضہ گژھہِ ہے پورہ اگر کامل صٲب کم از کم حاشیس منزے رسا صٲبنہِ تحریک دنک ذکر کرِ ہے» بے معنی بنان۔ گراو اگر صحیح تہِ مانون#، مگر محض امہ گراوِ مۅکھہ قصیدک غلط مفہوم پیش کرُن چھہ نہ صحیح۔

٭ بقول کامل وۅستہ کھار «اوس درویش حسابہ وانس منز آسان۔ کنن دنن نہ کہنی۔ دکان اوس پریتھ وزِ ادبی، سیاسی، مذہبی عقیدت مندو سیتۍ بٔرتھ آسان تہ پانوانۍ بحثہ مباحثہ کران۔ اڈۍ اژان تہ اڈۍ نیران۔»

# اگر بییۍ سنز زمین ورتاوتھ حوالہ دین ضروری چھہ تیلہ گژھہِ مرزا غالب یا باقی شاعرن ہندین غزلن پیٹھہ کنہ زمینہِ ہندین مالکن ہند ناو بطور حوالہ لیکھنہ یُن، تیلہ گژھہِ راہی سندین نصفہ کھوتہ زیادہ غزلن پیٹھہ کنہِ کامل سند ناو آسن۔

سوال جواب (ضمیہ)

میر مسرور: واریاہ کالہ پیٹھہ چھہ میانس ذہنس منز یہ سوال کھٹکان زِ کاشرس ادبس منز چھا ونیس تام تیتھ کانہہ فن پارہ (نظم کیو نثر) لیکھنہ آمت یُس دنیا کس بہلہ پایہ ادبس منز تحریر چھہ سپدمت یا اسۍ ہیکوا پننہ ادبک کانہہ نمونہ دنیا کین عظیم فن پارن لرِ لور تھٲوتھ، مثلا شیکسپیر سند ہیملٹ، کنگ لیر یا سفوکلیس سند اوڈیپس یا شاعری منز ملٹن ننۍ شاعری، ورڈسورتھ سنز شاعری یا افسانس منز چیخوف سندۍ عظیم افسانہ؟

جواب: میر مسروو سند سوال آو ژیرۍ پہن۔ چونکہ یہ چھہ اہم سوال، اتھ جواب دین چھہ ضروری، مگر امہ کس جوابس منز دمہ بہ بنمین کتھن پیٹھ غور کرنچ دعوت:

یمن زبانن ہنز کتھ تۅہہ کرمژ چھیہ تمن منز چھیہ زبان پرنچ تہ پرناونچ تہ سیاسی، علمی، اقتصادی، پریتھ سطحس پیٹھ امہ کہ ورتاوک اکھ مستقل تہ مستحکم تواریخ۔ چاہے سۅ پتہ انگریزی چھیہ یا اردو۔ کاشر زبان ٲس نہ سنسکرت دورس تام ادبی اظہارن منز مجرا سے۔ مسامسا آیہ اتھ منز ادبی اظہارہ رنگۍ کینہہ سرگرمی فارسی دورس منز۔ لل دید تہِ چھیہ امی فارسی دورچ پیداوار۔ امہ وقتہ آو شعری اظہارن منز فنس کن توجہ کرنہ۔ مگر امہ زبانۍ ہند یہ ورتاو رود سیٹھا محدود۔ پننس ادبس پیٹھ غور کرنک گۅڈنیک موقعہ چھہ کاشرین ترقی پسند دورس منز میلان۔ ادبی اظہارہ رنگۍ یۅس زبان ونہِ کھوکھشہ پکان آسہ، تتھ ما ہیکو امہ رنگۍ ترقی یافتہ زبانن سیتۍ مقابلہ کٔرتھ۔ کاشر زبان چھیہ محکومن ہنز زبان، یمن زبانن ہند ناو توہہ ہیوت تم زبانہ آسہ/چھیہ حاکمن ہنزہ زبانہ۔

بجر کتھہ پاٹھۍ چھہ میننہ تولنہ یوان۔ یہ تہِ چھہ ہیچھنہ ہیچھناونہ یوان تہ کانہہ فن پارہ یا شاعر کوتاہ بوڈ چھہ یا عظیم چھہ یہ تہِ چھہ نقادن تہ تدریسی نظام کہ ذریعہ ذہن نشین کرنہ یوان۔ اسۍ چھہِ کینژھا فارسی، اردو تہ واریاہ مغربی تعلیمہِ ہندۍ پروردہ (میہ چھہ نہ اتھ متعلق کانہہ منفی یا ناپسند رویہ)۔ تتھ روایتس منز یمن فن پارن یا شاعرن اسہِ سکولن منز پرناوۍ پرناوۍ عظیم وننہ آو، تمن ورٲے چھہ نہ اسہِ اندۍ پکھۍ کانہہ عظیم باسان۔ اسہ چھیہ پتاہ زِ شیکسپر یا تسندۍ ڈراما چھہِ عظیم تکیازِ اسہ چھیہ کتھ بار بار وننہ آمژ تہ پرناونہ آمژ۔ تہ یہ تہِ ہیچھناونہ آمت زِ شیکسپیر تہ تسندۍ ڈراما کتھہ پاٹھۍ چھہِ عظیم۔ جرمنی منز کمس چھیہ خبر زِ غالب چھہ کانہہ شاعر، عظمت تھاوۍ تو الگے۔ تمہِ پتہ غالبس منز کُس فن پارہ چھہ یُس عظیم چھہ۔ سٲنۍ روایت چھیہ نہ بڈۍ یا ایمبیشس فن پارہ لیکھنچ روایت۔ سانہِ روایژ منز چھیہ کلہم شاعری نظرِ تل تھاونۍ ضروری۔ غالب تہِ چھہ بوڈ ییلہ اسہِ تم معیار قبول کرۍ یمو کنۍ غالب تہ تسنز شاعری بٔڈ بنییہ۔ غالبس سپدۍ انگریزی پاٹھۍ پتمین پنژاہن ورین منز شیہ ستھ ترجمہ تہ ادہ ہیوت کینژو شاعرو (پرن والیو نہ) غالب سند ناو زانن۔ میر تقی میر زاننک چھہ نہ کانہہ سوالے۔ کینژو پنڈتو کٔر لل دید تہِ پروجیکٹ کرنچ کوشش، تہ تسند تہِ ہیوت کینژو انگریزی شاعرو ناو، شیخ العامس کس زانہِ؟ نتہ کیا چھیہ یمن دۅن فرق؟ گویا عظیم تہ عظمتکۍ پیمانہ تہِ چھہِ تنقیدی، تدریسی نظام آپراوان۔ غالب چھا بوڈ شاعر کنہ احمد فراز چھہ بوڈ شاعر، اکس عام انسانس کیا چھیہ خبر یوت تام نہ سہ ہیچھناونہ ییہ زِ اسۍ کتھ ونو عظمت۔ عظمت تہِ چھہ اکھ مفروضہ یُس اکھ سماج طے کران چھہ۔ یہ فیصلہ کرنس منز اوس نہ یا چھہ نہ سٲنس دورس منز سانہِ سماجک کانہہ دخل۔

اگر اسۍ پننۍ لکہ شاعری کلہم پاٹھۍ عالمی سطحس پیٹھ پیش کرو، اتھ کیازِ میلہِ نہ مقام، مگر پیش کرنہ خاطرہ چھہ شرط یہ شاعری ییہ جمع کرنہ۔ یہ ییہ مطالعس منز اننہ۔ امیک تنقیدی محاکمہ سپدِ۔ عالمی سطحس پیٹھ یِن تم مطالعہ پیش کرنہ۔ پرنہ تہ پرناونہ۔ ییتہ آیہ نہ چینچ قدیم شاعری (زبردست شاعری) کنہِ کھاتس منز تھاونہ، کاشرس کُس پرژھہِ؟

لہذا گژھہِ نہ یہ مسلہ آُسن زِ اسہِ چھا کانہہ فن پارہ عالمی فن پارن برونہہ کنہِ تھاونس لایق پیدہ کورمت بلکہ یہ زِ اسہِ یوس شاعری پیدہ کرمژ چھیہ، سۅ کتھہ پاٹھۍ مۅلوون۔

آزاد نظم تہ وزن

آزاد نظم گیہ سۅ نظم یتھ منز روایتی فارمہ (غزل، وژن، رباعی، پابند نظم، قصیدہ، بیترِ) نش آزادی آسہِ، وزنچ کانہہ پابند ترتیب آسہِ نہ (کاشرس ارودس منز مانۍ تو کانہہ مخصوص وزن مفرد یا مرکب آسہِ نہ ورتاونہ آمت)، تہ ردیف قافیہ نش تہِ آسہِ آزاد۔ وزنچ پابند ترتیبہِ نش چھہ مطلب یہ زِ فارسی وزن چھہ گنڈتھ رکنی ترتیب تھاوان۔ مربع، مسدس، مثمن بیترِ۔ آزاد نظمہ منز آو اتھ گنڈتھ ترتیبہ برعکس کنہِ بحر ہند اکوے رکن تواتر سان ورتاونہ۔ مثلا کامل سنز "گتکہ باز” نظمہِ منز چھیہ اکی رکنچ گردان اندہ پیٹھہ اندس تام، یمہ سیتۍ امہ نظمہِ ہندِ خاطرہ مطلوب آہنگ پیدہ کرنہ آمت چھہ۔

ترتیب وار وزن ورتاونہ سیتۍ اوس نہ پابند نظمن منز عام بولچالک تہ گفتگوک آہنگ پیدہ گژھان، تہ یپارۍ ٲس یہ وقتچ تہِ ضرورت۔ لہذا آیہ تم رکن زیادہ پہن کاشرِ نظمہِ منز دہراونہ یم سانہ زبانۍ ہندس آہنگس سیتۍ زیادہ واٹھ کھیوان چھہِ۔

نادم تہ راہی چھہِ امی لحاظہ متقارب زیادہ ورتاوان۔ آزاد نظمہِ منز چھہِ زیادہ پہن متقارب تہ رمل بجرن ہندۍ سالم تہ مزاحف رکن ورتاونہ آمتۍ۔ راہی ین تہ نادمن لیچھہ کینہہ نظمہ یمن منز کانہہ عروضی رکن جزوی طور ورتاونہ آو یعنی اتی چھہ کانہہ مصرعہ یا مصرعک کانہہ حصہ پابندی سان اتھ رکنس پیٹھ پکان تہ اتی چھہ نہ۔ اکھ قدم اگر برونہہ پکو یمو عروضی ارکانو نیبر نیرو تہ خالص شہہ کہ تل تراوک آہنگ ورتاوو یہ بنہِ نثری نظم۔ پریتھ زبانۍ چھہ عروضی آہنگ وراے پنن تہِ اکھ آہنگ آسان، میہ باسان کاشر زبانۍ ہند آہنگ چھہ متقاربس نزدیک، لہذا کاشرِ آہنگہ لیکھنہ آمژ نظم آسہِ توتہِ متقاربس سیتۍ رلان۔ متقارب چھہ میون مطلب امچ اکھ مخصوص شکل یعنی فعلن فعلن۔

مرکب وزن مثلا فعولن فعلاتن کہ ورتاوہ سیتۍ چھہ عروضک اکھ مخصوص پیٹرن پیدہ گژھان، لہذا چھیہ نہ امہ قسمکۍ وزن آزاد نظمہ منز ورتاونچ گنجایش۔

پیش چھیہ میانۍ پننۍ اکھ نظم۔ میہ چھیہ نہ کانہہ مخصوص آہنگ ورتاونچ کوشش کرمژ مگر ۔۔۔۔۔:

گُرتہ کُل تہ گُر — منیب الرحمن

پتہ ییلہ کُلہِ پیٹھہ
گُر ووتھ بۅن
بۅنہ کنہِ اوس
اکھ ژرِ بچہ نیتھہ نون لوٹ گلنٲوتھ
اکھ گاڈ زیو مژرٲوتھ
تہ بییہ اکھ بیور گگرس سیتۍ ہینگ ملنٲوتھ
پراران
تمۍ تج دو
تمۍ دوپ پانو ییتہِ چھہ نہ کانہہ سیود
میانی عقلہِ کھستھ گوو کُل
تمہِ پتہ ووتھ کُل گُرِ پیٹھہ بۅن
بۅنہ کنہِ اوس
گُر تس پراران
بییہ اکھ ژرِ بچہ
بییہ اکھ گاڈ
بییہ اکھ بیور
بییہ اکھ گگُر
تہ بییہ اکھ کُل

اکھ فیس بک سوال جواب۔ بیترِ!

اطہر بشیر صابس آو کیاہ تام خیال تہ نیوس بہ امۍ کیا تام ادیب بنٲوتھ۔ کرنوون میہ انٹرویووا۔ فیس بکچ یہ کتھ باتھ چھیہ ییتہ نس محفوظ کرنہ یوان۔

جواب چھہ سراسر میانۍ!

شاہد دلنوی: پننہ تخلیقی زندگی ہندس بارس منز ونی تو تفصیلہ سان؟
جواب: میانہِ تخلیقی زندگی ہند بیول پیوو فتح کدل کس سانہِ مکانہ کس دیوان منز ، میانین سکول دوہن منزے ییلہ شاعر ، ادیب کامل صابس نش یوان ٲسۍ۔ میانۍ کٲم ٲس یم حضرات ہیور دیوان خانس تام کھالنۍ تہ پتہ چاے یا تریش چاونۍ۔ اتہِ بیہنس اوسس نہ بہران۔ اتھۍ ینس گژھنس دوران تہ دروازس پیٹھ چپنہ فیتُن لاگنس کڈنس منز عمدا وقت لاگنس دوران یہ کیژھا یہنز کتھ باتھ بوزان اوسس، سے بنیوو میانہ ادبی دلچسپی ہند بیول۔تمہ پتہ یم کتابہ گرِ دستیاب آسہ تم تہِ آیہ بکار۔ سکول سے دوران ہیژ میہ شاعری کرنۍ۔ سکول میگزین کور میہ تیار 1973 منز۔ کاشرۍ پاٹھۍ تہِ دراس سیکشن۔ امہ برونہہ اوس نہ اتھ کاشر سیکشن درامت۔ کالجس اژان اژان ٲس میہ اکھ موٹ کاپی پننہ شاعری سیتۍ برمژ، یۅس میہ تتہِ پننس اردو ٹیچر محمد حیاتس صٲبس پرنہ خاطرہ دژ، تمی کٔر نہ وایس، میہ تہِ منجمس نہ زانہہ۔ کالج میگزینس تہِ کرۍ میہ تریشونے زبانن ترین ورین دوران سیکشن ایڈٹ۔ کالچ کین دوہن رود واریاہن نوجوان ادیبن سیتۍ ووتھن بیہن، ریڈیو، ٹیلی وجن، اکیڈمی ین گژھن، کافی ہاوس۔ امی ساری ماحولن اونس بہ ادبس کن۔ امہ علاوہ کامل صابنۍ پننۍ پیشین گویی یۅس تمو پریتھ اولادس متعلق کرمژ چھیہ (یا ونو سانۍ خصوصیات یم تمو بیان کرۍ متۍ چھہ):
منیب ہے کانہہ "گیون لہرا” چھہ سۅمبراں
دپاں زن چھیکھ بہ لۅلہِ منز لولہ ناوتھ

شہناز رشید: اردو ادبہ کہ پتہ کیاز ژھۅکیہ کاشرِ ادبچ ترقی پسند تحریک، زیوان زیوانے۔ ییلہ زن ییتکۍ سماجی تہ سیاسی حالات اتھ تحریکہ فکر عطا کرنہ خاطرہ موزون ٲسۍ؟
جواب: ترقی پسندی ٲس پورہ دنیاہس منز، یورپس منز تہِ، مگر کینژنے جاین بننیہ یہ اکھ تحریک۔ ہندوستانس منز آیہ یہ سیاسی طور بکار۔ آزادی خاطرہ لوکھ بیدار کرنس منز۔ تحریک بٔنتھ روز یہ اتہِ 20 یا 25 وری، تمہ پتہ رود صرف سوچ یُس تمن شاعرن تہ ادیبن ہنزِ زندگی ہند حصہ بنیومت اوس تہ اکثر ترقی پسند رودۍ تا حیات اتھ سوچس تل لیکھان۔ امہ تحریکہ سیتۍ میول ارود ادبس نقصان کھوتہ زیادہ فایدہ۔ جدیدیو دوپ نقصان ووت، حالانکہ تہِ چھہ نہ صحیح۔ کشیرِ منز تہِ دتۍ امۍ تحریکہ 10 یا 20 وری تہ کاشر ادب زندہ کرنس منز چھہ امیک اکھ بوڈ رول۔ ییتہِ تہِ ٲسۍ حالات سیاسی طور تمہ ساعتہ امہ تحریکہ خاطرہ سازگار، مگر یۅس سیاسی تبدیلی اسہِ جلدے آیہ، تمہ سیتۍ مۅکلیہ تحریک تہِ۔ حالانکہ کینہہ ادیب یمن سماجی برابری تہ انصاف کس پہلووس سیتۍ واریاہس حدس تام ذہنی برابری ٲس، تم رودۍ ترقی پسند سوچ پانس سیتۍ پکناوان، جدید بٔنتھ تہِ۔ کامل چھن اسۍ جدید مانان مگر تہندس ادبس منز چھہ سماجی پہلو غالب۔

علی شیدا: توہہِ چھا باسان زِ کشیرِ منز أسِتھ ہیکہِ ہیو توہۍ کٲشرِ زبٲنۍ ہنز زیادہ خدمت کٔرتھ…؟
جواب: کشیرِ منز ٲستھ ہیکہ ہا نہ شاید نیب کڈتھ یا اگر کڈتھ ہیکہ ہا تیلہ ہیکہ ہا بہتر پاٹھۍ دوستن نش واتنٲوتھ۔ رسالہ کڈنکۍ ژھرٹھ ٲسۍ میہ ہمیشہ۔ سکول تہ کالج میگزینن منز دلچسپی ننہ پتہ، رودس بہ سرینگر ٹایمز، آفتاب تہ آیئنہ اخبارن مختصر پاٹھۍ ادبی سیکشن ایڈٹ کران۔ ارود رسالہ "لا” کوڈ کالج کین دوہنے۔ رفیق رازس سیتۍ رٔلتھ کوڈ کاشر رسالہ "قاف” تہِ۔ مگر اکھ کتھ ونہ زبانۍ خدمت کرنہ بدلہ آسہِ ہے میہ پانس خدمت کرمژ۔ میہ آسہ ہن اکھ زہ شعری مجموعہ چھاپ کرۍ متۍ۔

مظفر عازم: عربو ییلہ عروض تہ بحور مقرر کرۍ، تمن ما آسہ ہن موسیقی ہنزہ، تہ عرب لہجہ چہ روایژ نظرِ تل یم تمن سیتۍ خاص آسہن۔ فارسی تہ اردو والیو کٔر کم کاسہ تبدیلی تتھ، کٲشرس منز عروض ورتاونس ما چھہ پرانہ شاعری امہ آیہ وارہ سننچ ضرورت؟
جواب: فارسی عروض یِنہ برونہہ چھہ، کاشریو شاعرو ہیجلۍ وزن ورتوومت۔ یہ ہیجلۍ عروض اوس وژنس سیتۍ نتھۍ گومت، لہذا رود یہ تتھۍ تام محدود۔ غزل ینس سیتۍ آو فارسی عروض، مگر شاعرن ٲس ہیجلۍ عروضچ ہٲل، لہذا رود تمیک اثر تہ برقرار۔ چونکہ فارسی عروضکۍ واریاہ وزن چھِہ بنیادی طور ہیجلۍ وزنے، لہذا اوس تمن یہ عروض تہِ نزدیکھے باسان۔ دویم کتھ چھیہ یہ زِ یمو شاعرو اون فارسی پیٹھہ یہ عروض، یتھہ پاٹھۍ فارسی یس منز یہ عروض ورتاونہ یوان اوس، سہ چھہ تمہ ورتاورہ نش مختلف یُس ارودس منز رایج چھہ۔ اسۍ چھہ پننین کاشرین شاعرن ہندس عروضی ورتاوس اردو عروض کہ ورتاوہ چہ نظرِ وچھان۔ اسۍ چھہِ نہ فارسی عروض کہ تمہ ورتاوہ نش واقف یُس فارسی یس منز رایج اوس۔ کاشریو شاعرو ونۍ لو لو غزل یم بالکل ہیجلۍ وزنہ مطابق وننہ چھہِ آمتۍ۔ سانین شاعرن ہند کلام اگر اردو عروض مطابق پھٹان تہِ چھہ، غیر موزون چھہ نہ، تکیاز سہ چھہ اکہ عروض مطابق پھٹتھ تہِ بییہ عروض مطابق موزون۔ فارسی عروض چہ کینہہ لیہہ چھیہ نہ سانہِ خاطرہ موزون، زبردستی یا کرتب بازی ہاونۍ گیہ الگ کتھ، مگر زبانۍ ہندس مزازس سیتۍ تہِ گژھہِ نا واٹھ کھیون۔ تہنز کتھ چھیہ صحیح نوِ سرہ چھہ سوچ کرُن، مگر سہ سوچ نہ یس راہی صابن پننہِ کتابہِ منز کورمت چھہ۔ خلیلس چھیہ نہ نکتہ چینی کرنۍ ضروری۔ پنن مذہب صحیح ماننہ خاطرہ چھیہ نہ بیۍ سندس مذہبس زچہ ژٹنچ ضرورت۔ تہنزِ کتابہ اون اتھ مسلس کھر۔ ِ

علی شیدا: راہی کامل نادم یا عازم سندِ شعری دورہ پتہ کۅس بدلونۍ نہج چھیہ توہہِ نظرِ گژھان کٲشرِ شٲعری منز….؟
جواب: کانہہ بدلونۍ نہج چھیہ نہ میہ نظرِ گژھان۔ کینہہ آوازہ چھیہ متاثر کن یمن منز رفیق راز، گلشن مجید تہ شفیع شوق شامل چھہِ۔ شہناز تہِ چھہ اکھ آواز یۅس شاعری پننس ماحولس سیتۍ واٹھ دنچ کوشش کران چھیہ۔ یہ ہیوک نہ گلشن یا شوق کٔرتھ۔ راز سنز اولین شاعری ٲس اتھ طرفس کن پکان مگر سہ آو جلدے اردو کس اثرس تل۔

نثار اعظم: توہہ کوروہ کینہہ کال برونہہ اعلان ز نیب ییہ نہ مزید چھاپنہ….بند کرنکۍ وجوہات ؟
جواب: نیب بند کرنکۍ وجہ چھہِ واریاہ۔ آوریر ہیوتن زیادہ گژھن۔ دویم یہ زِ بتھہِ پکناونس چھہ نہ کانہہ انتظام۔ کژتام نفر چھہِ یم دلچسپی ہاوان چھہِ، تہندِ خاطرہ ہیکون آنلاین شایع کٔرتھ۔ نیب بحیثیت رسالہ گژھہِ بند، مگر بحیثیت تحریک روزِ جاری۔ بہ چھس فی الحال کامل صابنین کتابن پیٹھ کٲم کران۔ وقت چھہ نہ میلان۔ تمہ پتہ چھم خیال کاشر شاعری انٹرنیٹس پیٹھ دستیاب کرنۍ۔ منزۍ منزۍ اگر کانہہ شمارہ نیبک تہِ دراو تہ جان۔

نثار اعظم: ٹوٹکہ ٹوٹکہ زندگی تحت یم واقعات کامل صابن قلمبند کرمتۍ چھہِ، تم جمع کٔرتھ کرۍ وا تُہۍ کامل صابن آٹو بیا گرافی چھاپ ؟
جواب: ٹوٹکہ ٹوٹکہ زندگی چھیہ نہ آٹو بیاگرافی بلکہ کینہہ یاداشت ہتھ زہ ہتھ صفحہ۔ سۅ کتاب تہِ چھپاون جلدے۔

علی شیدا: شوق..فہیم..گلشن مجید..م ح ظفر..راز .. بیترہ منزمہ دورکۍ شٲعر کتھ حدس تام ہیکۍ پننۍ ادبی چھاپ تراونس منز کامیاب روزتھ؟
جواب: فہیم سند کارنامہ چھہ "واد”۔ منفی سوچک ٲستھ تہِ کور امۍ رسالن اکھ ادبی ماحول بیدار۔ ظفر، گلشن ہیکۍ نہ پننۍ صلاحیت پورہ پاٹھۍ کارس لٲگتھ۔ شوق رود واریاہس حدس تام کامیاب۔ راز چھہ کنے شاعر یمۍ پننۍ پورہ صلاحیت کامہ لٲج تہ ساورے کھوتہ زیادہ کامیاب رود۔ امہ دورچہ ادبی کوششہ روزہ چھکرتھ۔ یوت تام نہ اکھ شاعر ژورِ پانژِ وہرۍ پنن کلام یا افسانہ سۅمبرن پیش کرِ، تمۍ سندِ ادبک جایزہ ہیون یا تمیک اندازہ کرن چھہ مشکل۔ اتھ دورس منز چھپییہ نہ کانہہ خاص کتاب یۅس کانسہِ ہنزِ کامیابی برونہہ کن انہِ ہے۔

علی شیدا: کٲشر شاعری کتیتھ چھیہ ازکل؟ توہۍ چھوا مطمئن؟اگر نہ، کیازِ؟
جواب: ییژ شاعری میہ تام وٲژ تمہِ تلہ چھہ ننان مایوسی ہنز کتھ چھیہ نہ کینہہ۔ بہ چھس مطمین زِ کاروان چھہ برونہہ کن پکان۔ البتہ چھیہ میہ زیادہ پہن زود گویی تہ برژر چہ کوششہ نظرِ گژھان تم گژھن کم گژھنہِ۔ اکھ علاقہ یور کن زیادہ توجہ دُین چھہ، سہ گوو نظم۔ اسہِ پزن نظمہ وننہ۔ غزل چھہ بنا بنایا۔ نظم تہِ تژھ یتھ narrative ونو۔ یہ گژھہِ نہ غزلکۍ پاٹھۍ discursive آسنۍ تکیازِ سانین شاعرن چھہ پنن سوچ قایم کٔرتھ تتھ ترقی دنۍ ہیوچھن۔ اسۍ چھہِ ژورمہ مصرعہ پتے ژھۅکان۔ اسۍ چھہِ نہ پننس سوچس زیادہ تکلیف دوان۔ امی چھہِ نہ لوکھ افسانہ تہِ وونۍ لیکھان۔ اگر لیوکھکھ، سہ تہِ اکھ مختصر چاٹھ یا کتھ یتھ منز نہ کانہہ characterization پییہ کرنۍ ، کانہہ پلاٹ پییہ بناون، مکالمس پیٹھ پییہ نہ کانہہ کٲم کرنۍ۔ ناول نہ لیکھنک تہِ چھہ یۅہے وجہ۔ یہ کتھ چھیہ نہ زِ اسہِ کیا چھہِ نہ پرن والۍ ۔ اسہِ کر ٲسۍ پرن والۍ۔ اسۍ چھہ 1950 پیٹھہ اکھ اکۍ سندی خاطرہ لیکھان بلکہ میہ باسان تنہ پیٹھہ گوو پرن والین منز ہریر مگر لیکھن والین ہند شوق تہ خاص کر محنت ژھۅ کیہ۔

شاہد دلنوی: نثر کیو نظمہِ کہ حوالہ یُس ادب از کل تخلیق سپدان چُھہ، زبان زِندہ تھاونک چھا تتھ اندر دم خم ؟
جواب: کلہم زبان چھیہ نہ ادبہ سیتۍ زندہ روزان۔ یہ چھہ اکھ مغالتہ۔ خبر کاشرۍ ما آسن دپان کانہہ فکر چھیہ نہ اسہِ چھہِ ادیب زبان برونہہ پکناوان۔ ادب چھہ زبانۍ ہند اکھ مخصوص ورتاو تہ ادیب چھہِ بے شک زبانۍ ہندس اتھ ورتاوس برونہہ پکناوان۔ مگر اگر زبانۍ ہند عام ورتاو (یُس زبانۍ ہندِ بقا خاطرہ زیادہ اہم چھہ) برونہہ پکہِ نہ، یہ خاص ورتاو تہِ ژھۅکہِ پانے۔ سنسکرت زبان ژھۅکیہ تمہِ ساعتہ ییلہ امیک ادب انتہایی تھزرس پیٹھ اوس، ارودس تہِ گژھہِ یی۔

علی شیدا: جدید شٲعری تہ عوامس درمیان یُس اکھ دوریر پیدہ چھہ گومت سُہ کم کرُن چھا ضروری؟اگر چھہ تیلہ کیا زن پزِ کرُن؟
جواب: جدید شاعری تہ عوامس ما آسہِ ژھین لوگمت، مگر شاعری تہ عوامس چھہ نہ کشیرِ منز ونہِ کانہہ ژھین۔مہجور اوس عوامس منز مقبول، نادم اوس عوامس منز مقبول، کامل اوس عوامس منز مقبول، عازم صاب تہِ چھہِ عوامس منز مقبول، رفیق راز چھہ عوامس منز مقبول، شہناز چھہ عوامس منز مقبول۔ البتہ سپزہ کاشرس شعبس منز انگریزن ہنزِ دیکھا دیکھی منز کاشرِ شاعری ہنز سطح ہرراونہ خاطرہ "علمی شاعری” ہنزہ کوششہ کرنہ، یعنی شاعری ہنگہ تہ منگہ مشکل بناونک سنز کرنہ تاکہ سہ شعبہ بنہِ ہے شاعری ہند مۅقدم۔

شاہد دلنوی: یتھ تیز رفتار ٹیکنالوجی ہندس دورس منز ییلہ زن پرتھ کانہہ شخص دویمِس پیٹھ سبقت نِنچ کوشش کران چُھہ تہ ییتہ روز مرہ زندگی ہندۍ انسانس ہتہ بدۍ چیلینج درپیش چھہ، چھا کاشرِ زبانۍ ہندس دامنس تھپھ کٔرتھ زندہ روزن ممکن؟
جواب: زبان چھیہ ترسیل۔ یوت تام یہ بکار ییہ توت تام روزِ، یمہ ساعتہ یا بکار ییہِ نہ پانے مرِ۔ یوت تام یہ مرِ توت تام تہ بروس لول، توت تام تہ کروس قدر۔ یمہ خیالہ ما ژھنون ترٲوتھ زِ ٲخرس چھہ امس مرُن۔

خالد منظور: کشیرِ منز چھہِ اکۍ سے لفظس مختلف علاقن منز مختلف تلفظ۔ امہ سیتۍ تہِ چھہ شعرک وزن کنہِ وزِ متاثر گژھان۔ یہ صورت حال کتھہ کنۍ گژھہِ ختم؟
جواب: سیٹھا جان سوال۔ یہ فیصلہ چھہ کرُن زِ تلفظ چھا اہم کنہ وزن چھہ اہم۔ میانہِ خیالہ گژھہِ لفظ پننہِ تلفظ حسابہ ورتاون۔ تاہم ونہ بہ اکھ کتھ زِ پریتھ زبانۍ چھیہ اکھ صورت سۅ آسان یتھ تمہِ زبانۍ ہنز ادبی صورت ونو۔ عام طور چھہ سنجیدہ ادب تتھۍ صورتس منز لیکھنہ یوان، مگر علاقایی رنگہ تہِ ہیکو زبان لیکھتھ ۔

نذیر آزاد: کاشرِ زبانۍ ترقی دنہ خاطرہ چھیہ سانہِ واریاہ تنظیمہ سرگرم۔ یہنزہ کوششہ سپزہ واریاہس حدس تام کامیاب تہِ۔ تۅہہ چھا باسان زِ اتھ روران گیہ تخلیقی تہ تنقیدی سرگرمی پس پشت؟
جواب: تنظیمہ آسہِ 1940 تہ 1950 ہس دوران تہِ تہ تمہ ساعتہ تہِ ٲس سیاست سرس۔ تنظیمہ گیہ جان کتھ مگر ادبی تنظیم چھیہ نہ ادبس کانہہ سۅچھ کران۔ یہ چھہ اکھ الگ شوق، زیادہ تر نوجوانن ہند شوق، لہذا کرۍ تن تم پپن شوق پورہ، اسہِ کیا، وۅنۍ گوو یم چھہِ ادب لیکھنہ بجایہ پننۍ انرجی میٹنگن کن لاگان۔ امہ سیتۍ واتہِ یہنزِ ادبی زندگی نقصان۔ یمن تنظمین ہند فایدہ روزِ تیلہ ییلہ یم عوامی سطحس پیٹھ کاشرِ ادبہ بجایہ کاشرِ زبانۍ ہنزِ خواندگی کن توجہ کرن۔ تمن میٹنگن منز گژھن نہ مشاعرہ آسنۍ۔ اسۍ چھہِ یم زہ چیز رل کران۔ امی چھیہ نہ عوامس منز زبانۍ ہنز دلچسپی ہررٲوتھ ہیکان۔

شاہد دلنوی: سون تشخص کِتھہ کنی روزہ قایم تہ عوامس اندر کاشریتک شعور بیدار کرنہ خاطرہ کیا چُھہ ادیبن ہند رول ؟
جواب: سون تشخص خص اگر تی چھس ونان
پھیرن زٹ کانگر کہالت تٲے تٲے
سانہِ تشخصکۍ یم پانژوے چیز چھہِ قایم، فکر چھیہ نہ کینہہ۔ زندگی گژھہِ نارمل پاٹھۍ گزارنۍ، یم جان اثرات آسن تم گژھن قبول کرنۍ۔ باقی یم کٲشریت تہ کاشریتک شعور وغیرہ چھیہ سیاسی نعرہ بازی۔ یم شوبن سیاست کارن، بییہ ٹینگ صابس ہوس نفرس۔ ادیبن گژھہِ صرف امیک احساس آسن، اتھ اصلاح کرُن، یہ شعور بیدار کرُن چھیہ نہ ادیبن ہنز کٲم۔ یہ چھیہ سیاست دانن تہ مفاد پرستن ہنز کٲم۔

نثار اعظم: کاشرِ شاعری ہندِ مستقبلہ کہ حوالہ چھہِ اکثر نقاد، تبصرہ نگار منفی خدشن ہندۍ شکار۔توہہ کیا چُھہ باسان کاشر شاعری چھا دوہ کھوتہ دوہ زوالچ شکار سپدان؟ توہہ کتھ حدس تام چھیہ یک رنگی ، تہ رپِٹِشن کاشرِ شاعری ہندِ زوالکۍ وجہ باسان۔ میہ ہوِین نوین تہ کم تجربہ کار شاعرن کیاہ چُھ تُہُند مشورہ ؟ شہناز رشید صاب، رفیق رازصاب تہ یمہ دورکین باقی کامیاب کاشرین شاعرن ہند آسنہ باوجود کیاز چھ نقاد مایوسی ہند شکار ؟ غالب راے چھیہ زِ کاشرس ادبی منظر نامس سام ہینہ پتہ چُھ یہ باس لگان زِ یتہ چھھیہ تنقید بُتھۍ وُچِھتھ کرنہ یوان ،مصلحتن چھیہ کام ہینہ یوان، اگر تی، تہ تیلہ کیاہ سدباب چُھہ، اتھ مسلس؟
جواب: تہنز کتھ چھیہ صحیح، کاشر نقاد چھہ مصلحت، دشمنی تہ دوستی مدنظر تنقید لیکھان۔ باقی زبانن منز تہِ مگر اسہِ چھیہ یہ ٹرینڈ بنیمژ۔ یُس نام نہاد نقاد کاملس پیٹھ لیکھان چھہ، سہ دپان راہی یس پیٹھ لیکھہ نہ کینہہ، یُس نقاد چھہ، سہ چھہ شاعر تہِ۔ تمس چھہ پنن تہِ claim۔ راہی صابن لیوکھ غزل سیمنارس منز مضمون کاشرِ غزلکۍ پڑاو، تتھ منز گژھہِ وچھن کیا سیاست چھین ورتاومژ۔ کتھہ پاٹھۍ چھِن غزلکۍ شاعر تقسیم کرۍ متۍ۔ مظفر عازم صاب واتۍ امریکہ، لہذا دوپکھ امۍ سند ناو ہینہ سیتۍ ییہ نہ کانہہ فایدہ۔ غزلہ کس پڑاوس منز چھہ شاد رمضان سند تام ناو ہینہ آمت، عازم صابن چھہ نہ کنہِ جایہ ناو۔ حالانکہ غزل لیکھن والین شاعرن ہند چھہ نہ تیوت بوڈ تعداد۔ یُس مسلہ کاشرس ادبس ونکین چھہ، تتھ پیٹھ چھہ نہ کانہہ لیکھان۔ سون ادیب (شاعر، افسانہ نگار) چھہ نہ محنت کران۔ امہ خاطرہ چھہ ضروری زِ کاشرین شاعرن تہ افسانہ نگارن دیہ اکاڈمی ترجمچ کٲم، ادب ترجمہ کرنک یُس محنتہ سان لیکھنہ آسہِ آمت۔ یمچ محنت ترجمس منز نظرِ ییہ تہ سانین ادیبن تہِ پریرت کرِ۔ کمۍ تام پرژھ میہ سوالس منز اکاڈمی ہند رول کیا چھہ، میہ گوو جواب دین مشتھ۔ میہ باسان اکاڈمی یوت تام نہ اکھ دور اندیش سیکریٹری نصیب سپدِِ توت تام تمیک آسن نہ آسن چھیہ ہشی کتھا۔ نتہ چھیہ یہ بس نوکری تہ افسری تام مۅژان بییہ نہ کینہہ۔

رود سوال تکرارک repetition ۔ غزلس منز چھیہ تکرارچ واریاہ گنجایش، امہ فارمچ نوعیتے چھیہ یژھے۔ قافیہ کنۍ، امہ فارمہ ہندیو مخصوص تجربو (مضمونو) کنۍ چھہ تکرار اتھ منز یوان۔ تمہ علاوہ چھہ پریتھ شاعر پننین کینژن بنیادی تہ مرکزی استعارن تہ علامتن یا پسندیدہ لفظن ہند تہِ مکرر استعمال کران۔ یم سٲری چیز تہ امہ پتہ اکۍ سے وقتس منز اک قسمہ کین حالاتن منز زندہ آسنہ کنۍ تہِ ہیکہِ تکرار پیدہ گژھتھ، مگر شاعر سنز کوشش گژھہِ روزنۍ سہ کرِ اتھ تکرارس منز تہِ کانہہ نویر یا کانہہ خاص پہلو پیدہ۔ نظم ہندس فارمس منز چھہ تکرار چ کمے پہن گنجایش۔ تکرار سیتۍ چھہ نہ شاعری زوال یوان بلکہ چھیہ شاعری اکھ بند تلاو بنان۔ میون مشورہ چھہ غزل آسہ یا نظم شاعرن پزن نوۍ صورت حال، نوۍ معنی دریافت کرنچ کوشش کرنۍ۔ شعر ؤنتھ رد کرنک عمل چھہ ضروری۔ یہ چھہ نہ ضروری یُس تہِ شعر وٹھن پیٹھ کھوت، سہ کیا آسہِ رژھرُن لایق۔ پننس کلامس گژھہِ بے دردی سان تنقیدی جایزہ ہیون تہ رد کرنک عملس گژھہِ نہ کھوژن۔

نذیر آزاد: نثری نطمہِ متعلق کیا چھیہ تہنز راے؟
جواب: نثری نطم ییلہ لیکھنہ ییہ اتی کرو تتھ پیٹھ کتھ۔ کُس چھہ لیکھان؟

شاہد دلنوی: تہۍ آسیُوہ گۅڈہ گوڈہ مِزاحیہ شاعری کران – از تہِ چھیہ تہندس کلامس منز امہ چہ پروہ تہ پرنگہ نظرِ گژھان- قریباً ووہ پٔنژہ وری برونہہ پور میہ کاشرس شیرازس منز تہند اکھ غزل – اکھ شعر کرہ پیش –
قد چُھس تہ وانگنس سومب
یڈ چھس تہ آنگنس سومب
وغیرہ وغیرہ
جواب: یوت تام نہ میہ نش کینہہ لیکھن کیت آسہِ مزاحیہ لیکھن چھہ میہ بہتر باسان بلکہ چھس بہ باقی شاعرن تہِ یۅہے درس دوان۔ گوڈے لیوکھمت دوبارہ لیکھنہ کھوتہ چھہ بہتر مشق جاری تھاونہ خاطرہ مزاحیہ لیکھن۔ مزاح چھہ زندگی ہند اکھ اہم جز۔ کامل صابن ٲس اکھ سۅمبرن ترتیب دژمژ، "اسن ترایہ” تتھ منز اوس تیتھ مزاحیہ ادب شامل یُس سنجیدہ ادبس سیتۍ تھاون لایق اوس۔ میہ چھیہ کینہہ سنجیدہ نظمہ تہِ لیچھمژہ یم نیبس منز چھپیہ، مگر میون نظم لیکھنک انداز چھہ ہنا مختلف۔ نیبس منز شامل میانہِ نظمہ مثلہ شعر، تریہ یار، نظم در نظم، گُر تہ کل تہ ُگُر، شام ، مشقہِ ہند خالی اند، اکھ نظم پانژھ خیال، بیترِ چھیہ سنجیدہ نظمہ۔ غزل سنجیدہ پاٹھۍ لیکھنس چھیم نہ اتھ وتھ یوان۔

میر مسرور: واریاہ کالہ پیٹھہ چھہ میانس ذہنس منز یہ سوال کھٹکان زِ کاشرس ادبس منز چھا ونیس تام تیتھ کانہہ فن پارہ (نظم کیو نثر) لیکھنہ آمت یُس دنیا کس بہلہ پایہ ادبس منز تحریر چھہ سپدمت یا اسۍ ہیکوا پننہ ادبک کانہہ نمونہ دنیا کین عظیم فن پارن لرِ لور تھٲوتھ، مثلا شیکسپیر سند ہیملٹ، کنگ لیر یا سفوکلیس سند اوڈیپس یا شاعری منز ملٹن ننۍ شاعری، ورڈسورتھ سنز شاعری یا افسانس منز چیخوف سندۍ عظیم افسانہ؟

جواب: میر مسروو سند سوال آو ژیرۍ پہن۔ چونکہ یہ چھہ اہم سوال، اتھ جواب دین چھہ ضروری، مگر امہ کس جوابس منز دمہ بہ بنمین کتھن پیٹھ غور کرنچ دعوت:

یمن زبانن ہنز کتھ تۅہہ کرمژ چھیہ تمن منز چھیہ زبان پرنچ تہ پرناونچ تہ سیاسی، علمی، اقتصادی، پریتھ سطحس پیٹھ امہ کہ ورتاوک اکھ مستقل تہ مستحکم تواریخ۔ چاہے سۅ پتہ انگریزی چھیہ یا اردو۔ کاشر زبان ٲس نہ سنسکرت دورس تام ادبی اظہارن منز مجرا سے۔ مسامسا آیہ اتھ منز ادبی اظہارہ رنگۍ کینہہ سرگرمی فارسی دورس منز۔ لل دید تہِ چھیہ امی فارسی دورچ پیداوار۔ امہ وقتہ آو شعری اظہارن منز فنس کن توجہ کرنہ۔ مگر امہ زبانۍ ہند یہ ورتاو رود سیٹھا محدود۔ پننس ادبس پیٹھ غور کرنک گۅڈنیک موقعہ چھہ کاشرین ترقی پسند دورس منز میلان۔ ادبی اظہارہ رنگۍ یۅس زبان ونہِ کھوکھشہ پکان آسہ، تتھ ما ہیکو امہ رنگۍ ترقی یافتہ زبانن سیتۍ مقابلہ کٔرتھ۔ کاشر زبان چھیہ محکومن ہنز زبان، یمن زبانن ہند ناو توہہ ہیوت تم زبانہ آسہ/چھیہ حاکمن ہنزہ زبانہ۔

بجر کتھہ پاٹھۍ چھہ میننہ تولنہ یوان۔ یہ تہِ چھہ ہیچھنہ ہیچھناونہ یوان تہ کانہہ فن پارہ یا شاعر کوتاہ بوڈ چھہ یا عظیم چھہ یہ تہِ چھہ نقادن تہ تدریسی نظام کہ ذریعہ ذہن نشین کرنہ یوان۔ اسۍ چھہِ کینژھا فارسی، اردو تہ واریاہ مغربی تعلیمہِ ہندۍ پروردہ (میہ چھہ نہ اتھ متعلق کانہہ منفی یا ناپسند رویہ)۔ تتھ روایتس منز یمن فن پارن یا شاعرن اسہِ سکولن منز پرناوۍ پرناوۍ عظیم وننہ آو، تمن ورٲے چھہ نہ اسہِ اندۍ پکھۍ کانہہ عظیم باسان۔ اسہ چھیہ پتاہ زِ شیکسپر یا تسندۍ ڈراما چھہِ عظیم تکیازِ اسہ چھیہ کتھ بار بار وننہ آمژ تہ پرناونہ آمژ۔ تہ یہ تہِ ہیچھناونہ آمت زِ شیکسپیر تہ تسندۍ ڈراما کتھہ پاٹھۍ چھہِ عظیم۔ جرمنی منز کمس چھیہ خبر زِ غالب چھہ کانہہ شاعر، عظمت تھاوۍ تو الگے۔ تمہِ پتہ غالبس منز کُس فن پارہ چھہ یُس عظیم چھہ۔ سٲنۍ روایت چھیہ نہ بڈۍ یا ایمبیشس فن پارہ لیکھنچ روایت۔ سانہِ روایژ منز چھیہ کلہم شاعری نظرِ تل تھاونۍ ضروری۔ غالب تہِ چھہ بوڈ ییلہ اسہِ تم معیار قبول کرۍ یمو کنۍ غالب تہ تسنز شاعری بٔڈ بنییہ۔ غالبس سپدۍ انگریزی پاٹھۍ پتمین پنژاہن ورین منز شیہ ستھ ترجمہ تہ ادہ ہیوت کینژو شاعرو (پرن والیو نہ) غالب سند ناو زانن۔ میر تقی میر زاننک چھہ نہ کانہہ سوالے۔ کینژو پنڈتو کٔر لل دید تہِ پروجیکٹ کرنچ کوشش، تہ تسند تہِ ہیوت کینژو انگریزی شاعرو ناو، شیخ العامس کس زانہِ؟ نتہ کیا چھیہ یمن دۅن فرق؟ گویا عظیم تہ عظمتکۍ پیمانہ تہِ چھہِ تنقیدی، تدریسی نظام آپراوان۔ غالب چھا بوڈ شاعر کنہ احمد فراز چھہ بوڈ شاعر، اکس عام انسانس کیا چھیہ خبر یوت تام نہ سہ ہیچھناونہ ییہ زِ اسۍ کتھ ونو عظمت۔ عظمت تہِ چھہ اکھ مفروضہ یُس اکھ سماج طے کران چھہ۔ یہ فیصلہ کرنس منز اوس نہ یا چھہ نہ سٲنس دورس منز سانہِ سماجک کانہہ دخل۔

اگر اسۍ پننۍ لکہ شاعری کلہم پاٹھۍ عالمی سطحس پیٹھ پیش کرو، اتھ کیازِ میلہِ نہ مقام، مگر پیش کرنہ خاطرہ چھہ شرط یہ شاعری ییہ جمع کرنہ۔ یہ ییہ مطالعس منز اننہ۔ امیک تنقیدی محاکمہ سپدِ۔ عالمی سطحس پیٹھ یِن تم مطالعہ پیش کرنہ۔ پرنہ تہ پرناونہ۔ ییتہ آیہ نہ چینچ قدیم شاعری (زبردست شاعری) کنہِ کھاتس منز تھاونہ، کاشرس کُس پرژھہِ؟

لہذا گژھہِ نہ یہ مسلہ آُسن زِ اسہِ چھا کانہہ فن پارہ عالمی فن پارن برونہہ کنہِ تھاونس لایق پیدہ کورمت بلکہ یہ زِ اسہِ یوس شاعری پیدہ کرمژ چھیہ، سۅ کتھہ پاٹھۍ مۅلوون۔

بادشاہ بیگم غلام دِ

یاد چھم نہ پیوان، کمۍ تام پرژھ میہ حال حالے زِ کامل سندس یتھ شعرس کیا معنی چھہ:
کامل امس ہے ڈیکہ ٹیکس تام واتہِ آب
کینژھا یکس ژہ بادشاہ بیگم غلام دِ

میہ ہیوک نہ تمس کانہہ جواب دتھ۔ وجہ چھہ یہ زِ واریاہ شاعری چھیہ تژھ تہِ یتھ نہ کانہہ معنی چھہ۔ یا یۅس معنی کاری ہنزن کوششن چلینج کران چھیہ۔ واریاہ لوکھ چھہِ تاویلہ، معنی ضرور پشراوان تہ سہ معنی بار بار پرن والین آپراونہ سیتۍ چھہ یتھین شعری اظہارن تہِ مقرر معنی قایم کرنہ یوان۔ میہ چھیہ الیٹ سنز مشہور نظم "پروفروک” ذہنس منز یوان۔ اتھ نظمہِ کیا معنی ہیکو کٔرتھ؟ میہ چھیہ کم از کم داہہ پنداہہ لٹہِ پرمژ مگر ہیچم نہ سمجتھ، معنی کرن تھاوۍ تو الگے۔ حالانکہ یژھہِ ہشہِ نظمہِ یۅس زبانۍ تہ فارمہِ سیتۍ تجربہ کین نامعلوم حدن تام واتنچ کوشش کران چھیہ ، تہِ چھیہ تاویلہ کرنہ آمژہ۔ دور کیا چھہ گژھن لل دیدِ ہندۍ شعر چھہِ ، مثلا

آمہ پنہ سدرس ناوِ چھیس لمان
کتہِ بوزِ دے میون میہ تہِ دیہِ تار

اتھ کس معنی کرو، یہ کتھہ پاٹھۍ ہیکو سمجتھ؟ ناوِ چھا پنہ سیتۍ لمنہ یوان؟ سہ تہِ سدرس منز۔ کمہِ پنہ سیتۍ ؟ سہ تہِ ییلہ لمن وول پانے ناوِ منز بہت آسہِ۔ مگر اسہِ چھیہ یتھین شعرن تہِ معنی یک تعین ضروری زٲنتھ تاویلہ کرمژہ۔ کانہہ شاعری چھیہ معنیس چلیبج تہ کران۔ ضروری چھہ نہ یہ آسہِ بٔڈ شاعری یا امہ قسمکۍ سٲری شعر آسن بڈۍ۔ مگر یہ چھہ زانن زِ امہ قسمچ شاعری تہِ چھیہ سپدان۔ لل دیدِ ہندِ شعرچ موسیقی چھیہ متاثر کران تتھے پاٹھۍ یتھہ پاٹھۍ الیٹ سنزِ نظمہِ "پروفروکچ” موسیقی چھیہ۔

کامل سند شعر تہِ چھہ ہتہ بدین شعرن ہندۍ پاٹھۍ موسیقی ہند نمونہ۔ یوٚدوے سانۍ کینہہ نقاد غزلہ چہ اتھ موسیقی ناپسند کرنہ لگۍ متۍ چھہِ تہ پزۍ پاٹھۍ شاعری ہندِ خاطرہ ناگزیر چھیہ نہ، امہ چہ اہمیژ تہِ ہیکو نہ انکار کٔرتھ۔ ڈیکہ ٹیکس تہ یکس، تام تہ غلام قافیو علاوہ یم زیچھہ آوازہ کامل سندس شعرس منز چھیہ مثلا / تا، وا، آ، ژھا، با،شا، لا/ تم چھیہ شعرس منز موسیقی ہنز اکھ خوشگوارسطح بناوان۔

شعرن منز واضح معنی آسُن چھہ نہ ضروری، مگر یہ چھہ ضروری زِ شعر گژھہِ کُنہِ معنی یس کن اشارہ کرن۔ واضح معنی نہ آسنہ کنۍ چھہ شعر بعضے اکہ کھوتہ زیادہ معنی ین کن اشارہ کران۔ شاعری (فنون لطیفہ) تہ باقی علمن منز چھیہ بنیادی فرق یہے زِ ییتہ باقی علم صحیح تہ واضح فہم و ادراکس کن لمان چھہِ، شاعری چھیہ اتھ چلیبج کران۔پروفروک نظمہِ ہند معنی چھہ پرناون والیو نقادو تتھے پاٹھۍ واضح طور بیان کوٚرمت، یتھہ پاٹھۍ اسۍ لل دیدِ یا شیخ العالم سندین شعرن یونیورسٹی ہندس شعبس منز کران چھہِ۔مثلا راہی چھہ کہوٹ کتابہِ منز شیخ العالم سندس "ژورس رٲوم تارس وتھ” شروکس اکھ پورہ دلچسپ ڈراما تعمیر کٔرتھ اکھ پریسایز معنی عطا کرنچ کوشش کران، بالکل یۅہے معنی تہ تمنے لفظن منز چھہ شفیع شوق پننس مضمونس منز یۅہے ڈراما پیش کران۔ (کمۍ کسندِ پیٹھ چھہ یہ ڈراما تلمت تہ ونن چھہ رژھ کھنڈ مشکل تکیاز کاشرین ادیبن چھہ حوالہ دین احساس کمتری باسان۔ شوق سند مضمون چھہ تاریخواری حسابہ گۅڈہ لیکھنہ آمت۔)

یوٚدوے یہ معنی بیان کرنک عمل درس و تدریس تہ سانہِ ذہنہ چہ علمی تشفی خاطرہ ضروری چھہ، مگر یہ چھہ بالاخر پریتھ قاری سند اکھ پنن ذاتی عمل آسان۔ شعرکۍ انسلاکات تہ ردعمل تہ امہ کہ تجربک دایرہ ہیکہ نہ پریتھ قاری سندِ خاطرہ لازمی طور ہہوے ٲستھ۔

بہ چھس نہ واریاہن شعرن واضح معنی قایم ہیکان کٔرتھ تکیازِ میہ چھیہ ہمیشہ زبان ٹھیک پاٹھۍ نہ زاننہ کنۍ اتھ کارس منز مشکل یوان۔ کاملنس شعرس منز ڈیکہ ٹیکک لفظی معنی یا آب واتنک لفظی معنی چھہ میانہِ خاطرہ ناممکن، مگر بہ ہیکہ ہمیشہ شعر کہ فراہم کردہ سیاق نش اکھ کلہم معنی پننہ خاطرہ اخذ کٔرتھ۔ شعرس واضح معنی دنہ خاطرہ چھہ یہ طے کرُن زِ لفظ "امس” کس کن چھہ اشارہ؟ یکس کن کِنہ یکہ وٲلس مدمقابلس؟ پریسایز معنی خاطرہ چھہِ یتھۍ ہوۍ سوال اہم آسان۔ دویمس مصرعس منز چھا متکلم (کامل) پانس "ژہ بادشاہ” ؤنتھ بیگم یا غلام بتھہِ دنچ سفارش کران کنہِ متکلم چھہ پننس اتھس منز موجود بادشاہ، بیگم یا غلام دنہ چہ چالہ پیٹھ پانس سیتۍ بحث کران؟ یکہ چھا مدمقابلن پتھر تروومت کِنہ متکلم چھہ تتھ یکس متعلق سوچان یُس تسندِ علمہ مطابق مد مقابل سسندس اتھس منز چھہ؟ امہ علاوہ شعرک tone کیا چھہ؟ یم سوال طے کرۍ تھے ہیکہ شعرک کانہہ واضح معنی بیان سپدتھ۔

بہ ییلہ کانہہ شعر پران چھس میانۍ نظر چھیہ نہ گۅڈنی تمہ کس معنی یس کن گژھان۔ گۅڈنی چھہِ امکۍ لفظ، تمو سیتۍ تعمیر کرنہ آمتین پیکرن، تشبیہن، استعارن تہ موسیقی کن گژھان۔ تمہ پتہ امہ کس اظہار کس نوعتس کن۔ پوٚتس چھیہ تمہ شعرچ معنویت تہ کھلان۔ کامل سند شعر چھہ نہ امہ کہ معنی کہ لحاظہ اہم بلکہ امہ کہ غیر روایتی اظہارہ کنۍ۔ اتھ منز چھہ تاسک اکھ رومانچک ڈراما پیش کرنہ آمت یُس زن غزلس منز عام طور میلان چھہ نہ، دوٚیم یہ زِ امیک مضمون (موضوع) تہِ چھہ غزلہ کہ روایتی مضمونو نش الگ تہ غیر روایتی۔ یمہ غزلک یہ مقطع چھہ سہ ہیکون کامل سندین بہترین غزلن منز شمار کٔرتھ۔ امہ غزلک اکھ امتیاز چھہ یہ تہِ زِ یہ چھہ کامل سندین تمن غزلن منز شامل یمن منز متحرک الاخر ردیف ورتاونہ آمت چھہ۔ یہ اوس نہ فارسی وزنن ہندس اثرس تل کاشرس غزل منز ورتاونہ یوان۔ کاملن کھول اتھ دسلابہ کرتھ مزید امکانن ہند بر۔

ملالہ موت ادب

کاشر ادب چھہ ملالہ موت ادب! یہ چھہ نہ معرکہ آرایی ہند ادب، یہ چھہ غیر احتسابی ادب، یہ چھہ نہ تنقید شناس۔یہ چھہ نہ تعریف گذار ادب تہِ۔ پتھ کیا تہ کیازِ؟ پٔرو برونہہ کن۔

بہ تہِ چھس کاشر مگر بہ چھس زندگی ہندس اکس بڈس حصس دوران مختلف لوکن تہ کلچرن منز رودمت تہ تمن سیتۍ چھس ووتھمت بیوٹھمت۔ مقصد چھہ نہ کاشرۍ تنقیدک ہدف بناونۍ مگر میہ چھہ احساس گژھان زِ کاشرۍ تنقیدس تہِ کھوژان تہ تعریفن تہِ۔ تنقید کرنس چھہِ نہ کھوژان بلکہ گوژھکھ نہ کانہہ تنقید کرُن۔اکھ لۅکٹ کمیونٹی آسنہ کنۍ چھہِ لہازا تنقید کرنس تہِ لوبے ہیوان۔ کتھ چھیہ نہ زِ باقی کلچرن منز کیا چھہ تنقید پسند کرنہ یوان۔ سارنے چھہ شرارت کھسان مگر کینژن منز چھہ برداشت کرنک مادہ زیادہ آسان۔ کاشر چھہ سٲری تعلقات ختم کرنس پیٹھ واتان۔ یہ گوو اکھ پاس۔

دویم پاس چھہ یہ زِ کاشر چھہ نہ تعریف تہِ یژھان کرُن۔ یژھ کتھ چھیہ نہ زِ یہ کیا چھہ نہ پننۍ تعریف یژھان، بلکہ چھہ ہمیشہ یہے وۅمید ہیتھ روزان زِ پریتھ شخص گوژھم تعریف کرُن، تعریفن ہند کانہہ وجہ آسہِ یا نہ آسہِ، مگر پانہ کرِ ہے نہ کٲنسہِ تعریف۔ کٲنسہ تعریف کرُن چھہ کاشرس سیٹھا لوژ کٲم باسان۔ ممکن چھہ کنہِ مصلحژ تل ما کرِ کنہِ ساعتہ کٲنسہِ تعریف، شاید امہ مۅکھہ زِ پتاہ چھیم یم چھہِ اپزی تہ اتھ چھہ نہ کانہہ حرج۔ مگر کٲنسہِ حقیقی تعریف کرنۍ چھہ نہ امس قبول۔ شاید چھہ امس احساس کمتری گژھان، شاید چھہ امس عذروُن یوان۔

سون ادب چھہ نہ امہ جذباتی صورت حال نش خالی۔ کنہِ جایہ چھہ نہ کٲنسہِ ہندۍ دل کھول کے تہ شوبہ نۍ تعریف میلان۔ مصلحتی تعریف چھہِ عام۔ بییہ چھہ بیاکھ چیز زِ کنہِ ساعتہ چھہِ کٲنسہِ ہندۍ تعریف صرف پنن بجر ہاونہ خاطرہ کرنہ یوان۔ مطلب چھہ نہ تعریف بلکہ پنن بجر ہاون آسان۔ تنقیدس تہِ چھہ لوبے ہینہ یوان۔ کٲنسہِ اگر کانہہ کتھ تنقیدی اندازہ ونۍ تتھ منفی بنٲوتھ جایہ جایہ پھرنس چھہِ پنن پاس ٹایم زانان۔ یُس امہ تنقیدک ہدف آسہِ سہ چھہ اتھ افواہ بازی پیٹھ یاتہ پنن پان مظلوم بنٲوتھ پیش کران، نتہ پننۍ سٲری جنگی حربہ زیر عمل انان تہ اتھ پانس خلاف بٔڈ بارہ ژۅے مانان۔

ادب چھہ تعریف تہِ منگان تہ تنقید تہِ۔ یمو دۅیو کارکردگیو روس چھہ ادب لاتعلقی ہند شکار گژھان!

گرد تنییہ

میہ ہوۍ چھہِ واریاہ یمو سلہِ پیٹھے شعر وننۍ شروع کرۍ مگر کتابا وتابا چھٲوکھ نہ کینہہ۔ باقین ہند چھیم نہ پتاہ البتہ میانہِ امہ صورت حالکۍ چھہِ تریہ وجہ۔

ساروے کھوتہ بوٚڈ تہ عجیب وجہ اوس یہ زِ بہ اوسس اکس ناودار شاعر سند نیچو تہ ادبس منز پننہ ذاتی، خودمختار تہ سنجیدہ دلچسپی باوجود ٲس ادبی حلقن منز میانۍ زان تہ آوبھگت صرف تہ صرف مالۍ سندی حوالہ۔ اتھ صورت حالس منز پنن پان پروجیکٹ کرُن اوس میہ عجیبے باسان۔ امہ کنۍ روز میانۍ ادبی کارکردگی ذاتی سطحس پیٹھ تہ مخصوص دوستن ہندس دایرس تام لۅکٹس پیمانس پیٹھ محدود۔

دویم وجہ چھہ پننین لیکھنہ چین کوششن متعلق میون پنن غیر مطمین تہ غیر تشفی بخش رویہ۔ پننس کنہِ چیزس سیتۍ روز نہ میانۍ دلچسپی قایم تکیازِ یُس تہِ چیز لیوکھ، اکھ زہ پچھ گژھتھ کھوٚت نہ پانسے ٹارِ۔ یُس تنقیدی شعور شاعری پرنہ بدلہ ارود تہ انگریزی تنقید پرۍ پرۍ میہ پانس اندر ژیول، سہ رود ہمیشہ میانین تخلیقی صلاحیتن ٹھۅلہِ۔ بلاے اتھ زیادہ پرنس۔ پننین چیزن سیتۍ امہِ میانہِ جلدے راون واجنہِ دلچسپی کنۍ ہیوکس نہ بہ کانہہ چیز رژھرٲوتھ۔

تریم وجہ چھہ یہ زِ میانۍ زندگی چھیہ 1980 پیٹھے یتھ دمس تام اکس عجیب گردشس منز ۔قدم اکس جایہ ٹھہراونک چھہ نہ کانہہ موقعہ، میانۍ زندگی چھیہ واقعی ژلونین ژہین ہنز سوارۍ۔ اکہ لٹہِ کٔھستھ چھہ نہ وسنک کانہہ پاے۔اکاے صورت چھیہ باقی۔ سہ گوو دب۔ یمہ ساعتہ لگہِ پانے یمہ پتھر لاینہ۔ توہہ تہِ کرو تمہ ساعتہ خبر۔

پریتھ شاعرس چھہِ پننہ زندگی منز پنداہ، وُہ یا پنٕزہہ وری تم یوان یمن منز سہ پنن بہترین ادبی سرمایہ پتھ کن تراوان چھہ۔ حالانکہ اکثر شاعر چھہِ زندگی ہندین ٲخری دمن تام لیکھان مگر سہ چھہ صرف پتہ کرافٹ آسان۔ تتھ منز چھہ نہ سہ روح، سہ جود، سۅ تازگی آسان یۅس تہندِ بہترین وقتچ پہچان آسان چھیہ۔ شاعر چھہِ پننس شعری سفرس منز اکہِ وقتہ تتھ مقامس پیٹھ واتان ییتہ تم کنہِ تہِ خیالس، کنہ تہِ چیزس کرافٹ کہ مدتہ شعر چھہِ بنٲوتھ ہیکان۔ تہنزِ شاعری ہند جود تہ تازگی چھہِ وقتس سیتۍ سیتۍ راوان مگر کرافٹ چھہ تیتھ چیز اگر اکہ لٹہِ اتھس منز آو، یہ آو ہمیشہ خاطرہ۔

سانۍ واریاہ شاعر چھہ وۅنۍ صرف کرافٹ ورتاوان۔ ہمعصرن متعلق، ہمعصر بزرگن متعلق نہ، بلکہ یمن برونہہ کنہِ ونہِ واریاہ میدان آسہِ، تمن متعلق کانہہ فیصلہ صادر کرن چھہ مشکل مگر بہ ہیکہ فی الحال یہ ؤنتھ زِ سون ہردلعزیز شاعر رفیق راز تہِ چھہ وۅنۍ کرافٹے ورتاوان۔ یُس جود تہ تازگی تسنزِ شاعری منز 1980 پیٹھہ 1990 تام ٲس، سۅ چھیہ وۅنۍ کرافٹس تل سۅتیمژ۔

نادم سند جود اوس 1950 پیٹھہ 1965 تام، کامل آو راہی یس پتہ مگر امۍ سنزِ شاعری ہند جود رود 1960 پیٹھ 1979 تام جاری، راہی تہ فراق سنزبہترین شاعری آیہ 1970 پیٹھہ 1985 تام برونہہ کن، حالانکہ یم ٲسۍ واریاہ کالہ پیٹھہ شاعری کران۔ یہ دور چھہ کٲنسہ شاعر سنزِ زندگی منز ژیرۍ یوان۔ دنیا کس ادبس منز چھیہ یژھہ مثالہ موجود۔ کاشرس منز چھیہ قاضی غلام محمد سنز مثال، امۍ سنزِ شاعری ہند جود گوو ژیرۍ قایم تہ رود 1980 پیٹھہ 1990 تام، سیٹھا ژھوٹ دور۔

امہ رنگہ ییلہ بہ پانس کن نظر تراوان چھس تہ یہ اقرار کرن تہِ چھہ ضروری ز کینژن میہ ہوین تک بندن ہنزِ زندگی منز چھہ نہ یتھ کانہہ دور آسانے، لۅکٹس پیمانس پیٹھ تہِ نہ۔ مگر ادبک کاروان چھہ نہ پیٹھم کژتام شاعر برونہہ پکناوان، یم چھہ امہ کاروانچ شوب ضرور بنان، مگر کاروان بناون والۍ چھہِ میہ ہوۍ کٲتیا شاعر/تک بند آسان یم پننہِ حوصلہ تہ سرگرمی کنۍ کاروانس اکھ باضابطہ شکل دوان چھہِ۔ زندہ باد تم ساری ادیب یم کاروانس منز گردِ بزۍ گژھتھ پننۍ خولہ خط تام راوراوان چھہ!

بقول کامل:
گرد تنییہ تہ اوسس بہ پایمال ہیے

ترین لفظن ہنز داستان

ییلہ میہ امین کامل سنز نٔو شعرہ سۅمبرن تیار کٔر، ٲخرس پیٹھ رود سوال امہ کہ ناوک۔ کامل صابن اوس نہ کانہہ ناو دیتمت، تکیازِ تمۍ ٲس نہ اتھ پانہ کانہہ کتابی شکل دژمژ۔ ییتہ ییتہ میہ یا تس کانہہ چیز اتھہِ آو بہ رودس ٹایپ کران۔ کتابہِ منز شامل شروعات چہ نظمہ یم 1970 دوران لیکھنہ آسہ آمژہ تہ نیب رسالس منز آسہ تمنے دۅہن چھپیمژہ، آسہ نہ کنہِ کتابہِ مںز شامل حالانکہ "پدس پود ژھاے” ٲس تمنے دۅہن چھپیمژ۔ تتھ منز ہیکہ ہن تم شامل گژھتھ۔ تم نظمہ یمن منز قصیدہ تہ چھہ کرِ میۍ اتھ کتابہِ منز شامل۔

بہرحال، پوتس اوس سوال کتابہِ ہندِ ناوک۔ کامل صابس پرژھنہ بجایہ خبر کیازِ لوگس بہ پانے سوچنہِ۔ مگر سیتی سوچم نہ کتاب چھیہ تسنز ناو تہِ تھاویس سے، ترتیب دنہ سیتۍ کیا گوو۔ میہ چھہِ یاد تمۍ سندۍ لفظ ییلہ میہ تس پرژھ۔ دوپن "تھاوس کینژھا”۔ میہ اوس گۅڈے ژیونمت زِ کامل اوس پننہِ شعری شخصیژ نش اوت تام الگ تہ واریاہس حدس تام بےنیاز تہ بے تعلق سپدمت۔ یہ کتاب اوسس بہ پننی شوقہ تیار کران۔

میہ آیہ امۍ سنزن شعرہ سۅمبرنن ہندۍ ناو برونہہ کن۔ اکھ "مس ملر” ترٲوتھ یۅس اکھ ابتدایی کوشش ٲس، وچھ میہ زِ امۍ چھہِ تمام کتابن ہندۍ ناو ترین لفظن پیٹھ مشتمل کرۍ متۍ۔ یہند ناول "گٹہِ منز گاش” چھہ تریہ لفظ، منزم لفظ، لاحقہ’منز’ چھہ دۅن اندن ہندین لفظن منز رشتہ قایم کران۔ امی وقتچ بیاکھ کتاب "کتھہِ منز کتھ” تہِ چھہِ تریہ لفظ تہ یمن درمیان تہِ چھہ یتھے تعلق۔ امہ پتے یۅس کتاب برونہہ کن آیہ، سۅ ٲس یہنز دویم شعرہ سۅمبرن "لوہ تہ پروہ”۔ امہ کتابہِ کور کامل کاشرِ شاعری ہنزن توانا آوازن منز شامل۔ امیک ناو تہِ چھہ ترین لفظن پیٹھ مشتمل۔ اتھ منز چھہ منزم لفظ، حرف اتصال۔

شعرہ سۅمبرنہ یم امۍ امہ پتہ پیش کرِ آسہ امۍ سندس نٔوس اسلوبس مزید مستحکم کران تہ امی نسبتہ چھہِ تمن ہندۍ ناو تہِ غیر روایتی۔ "بییہ سے پان” تہ "پدس پود ژھاے”، یم دوشوے ناو تہِ چھہِ ترین لفظن پیٹھ مشتمل، مگر یہندۍ منزیم لفظ چھہِ تکرار پیش کرنہ بدلہ ناون ہندv ارتقا تہ تنوعس کن اشارہ کران۔ اتھۍ چیزس سٔنتھ کور میہ فیصلہ زِ ناو گژھہِ ترین لفظن پیٹھ مشتمل آسن۔ ییژ ہن ٲس طے، مگر کیا؟ تہِ طے کرُن اوس مشکل، تکیازِ یہ شاعری اوسس بہ مرتب ضرور کران مگر یہ ٲس نہ میانۍ شاعری۔ میہ آو خیال زِ پننۍ دخل اندازی کم کرنہ خاطرہ کرہ بہ ناو امۍ سندی کنہِ شعرہ منز اخذ۔ یہ اوسم معلوم زِ یہ آسہِ امۍ سنز ٲخری شعرہ سۅمبرن، امہ کنۍ زِ امۍ ٲس 1980 برونہے شاعری تقریبا تراومژ۔ امہ پتہ چھیہ امۍ اکا دکا غزلو علاوہ زہ ژور نظمہ لیچھمژہ یم کشیرِ ہندین تواریخی حالاتن متعلق چھیہ۔ امہ قسمہ چہ نظمہ لیکھنک دس تُل امی۔

yim_myeni_sokhan

یہ خیال تھٲوتھ زِ یہ آسہِ امۍ سنز ٲخری شعرہ سۅمبرن تہ پننہِ شعری شخصیژ متعلق امۍ سنزِ بے نیازی مد نظر آیہ میہ یم تریہ لفظ امۍ سندِ قصیدہ منزہ اتھۍ: "یم میانۍ سخن”۔ اوت تام ٲسۍ امۍ سنزن کتابن ہندۍ ناو اکھ پیکر، اکھ تصور تہ اکھ استعارہ برونہہ کن انان۔ میہ اون یمن لفظن ہندِ دسۍ یمن ہند لفظی پہلو برونہہ کن۔ یمن لفظن منز باسیہ میہ بے نیازی تہِ، طنز تہِ تہ دعوی تہِ۔ میہ ییلہ کامل صابس یہ ناو تجویز کور، سونچمت آسین زِ میون ناو تھاونک راز چھس کتھہ تام پاٹھۍ اتھہِ آمت، تہ شاید اتھۍ پیش نظر وونن "ٹھیک چھہ”۔ نتہ ما آسہِ ہس پانس تہِ یتھے ہیو کانہہ ناو ذہنس منز، کنہ اتھ منز تہِ ٲس تسنز بے نیازی۔

میہ باسان "یم میانۍ سخن” چھپاونہ دنس منز ما آسہِ ہے پوتس امس میہ ہوس نابکار نیچوۍ سنز خوشی مقصد!