گاہ چون پیوان گٹہِ

candle

گاہ چون پیوان گٹہِ
اکہِ لٹہِ ییہم نا

ییلہ میانۍ موج گذرییہ، تس ٲسۍ میہ ژور ؤری وچھنس گمتۍ۔ پننہ تسلی خاطرہ اوسس بہ واریاہس کالس چۅرتہ گژھتھ پریتھ رٲژ نیت کران زِ بہ وچھن سۅ خوابس منز۔ مگر صبحس اوسس سیٹھا مایوس گژھتھ وۅتھان۔ اتھ دوران ٲس میانۍ جذباتی حالت ناقابل بیان۔ صرف آم حبہ خاتونہِ ہند یہ شعر بکار یس یمن دۅہن میٲنس دلس تہ ذہنس پیٹھ اوس یوت تام میہ موج خوابۍ آیہ۔ یتھۍ ہوۍ شعر چھہِ میہ اکس ہمعصر عربی شاعر سنزِ اکہِ نظمہِ ہنزہ یم زہ لٲنہ یاد پاوان۔

والجُمَل القصيرة
أجمل وسيلة لعبور المحيطات

تہ ژھوٹۍ جملہ چھہِ
سدرس تارہ ترنکۍ بہترین وسیلہ

یہ ٲٹھن (8) لفظن ہند شعر چھہ کاشرِ زبانۍ ہند ژھوٹہِ کھوتہ ژھوٹ شعر تہ اتھ منز چھیہ سۅ قوت زِ امۍ تورس بہ اتھ مشکل وقتس منز بیہ زبان جذباتن ہندس سدرس تارہ۔ یہ شعر اوس امہ برونہہ تہِ امہ چہ غنایژ کنۍ زیوِ کھوتمت، مگر یہ ہیکہِ یتھس کنہِ موقعس پیٹھ میہ یتھہ پاٹھۍ بکار یتھ، امیک اوسم نہ کانہہ اندازہ۔ ییلہ ییلہ کانہہ شعر پرنہ یوان چھہ چاہے سہ ہتہ بود ؤری پرون آسہِ، تمچ تخلیقی عمل چھیہ پرن وٲلس منز منتقل گژھتھ زو لبان۔ بلکہ ونہ بہ یہ کتھ یتھہ پاٹھۍ زِ تخلیقی عمل چھیہ شعر سپدنہ برونہہ، دوران تہ پتہ تہِ جاری روزان۔ تخلیقی عمل چھیہ ہمیشہ موجود تہ حاضر۔ کہنی چھہ نہ پرون۔

غنایت چھیہ انسان سندس کنرس جلوہ ریز کران۔ یمہ شعرچ غنایت چھیہ امہ چہ فارمہ (ہیتک) اکھ اٹوٹ حصہ۔ وژنک اکھ اکھ لفظ چھہ موسیقی ہنزن تارن زیر دوان۔ وچھو امہ شعرچ صوتی تفصیل۔

[گٹہِ] تہ [لٹہِ] چھہِ اتھ شعرس منز تیتۍ ننۍ زِ قافیہ چھہ امہ چہ ٲڈرنہِ ہند مرکز باسان۔ بلکہ چھہ یمن سیتۍ بیاکھ لفظ [اکہِ] تہِ قافیہ رنگۍ رلان۔ امہ علاوہ چھہِ [گٹہِ] تہ [گاہ] تہِ آوازہ ہشرہ کنۍ قافیہ چی اکھ صورت۔ قافیہ علاوہ چھیہ نون غنایی آواز تہِ ترییہ لٹہِ [چون، پیوان، نا] لفظن منز ورتاونہ آمژ۔ /ی/ آواز تہِ چھیہ [یوان] تہ [ییہم] لفظن منز مشترک۔ /او/، /آ/، /ای/ تہ /آ/ ژور زیٹھۍ مصوتہ تہِ چھہِ امی ترتیبہ شعرس منز ژھۅٹین مصوتن مقابلہ چھکرتھ۔ امہ علاوہ چھہ /ہ/ آوازِ ہند تکرار تہِ [گاہ] تہ [ییہم] لفظن منز موجود۔

لسانی پہلو تہِ چھہ دلچسپ۔ شاعر چھہِ گرامر کین اصولن ہنز خلاف ورزی اکثر کران۔ صحیح فقرہ چھہ [چون گاہ] مگر شعرس منز چھہ پھر تھُر [گاہ چون] بناونہ آمت شاید لفظ "گاہ” سیتۍ شعر شروع کرنہ خاطرہ تاکہ یہ روزِ زیادہ پہن نظرن تل۔ ژۅن لفظن ہندس اتھ مصرعس منز چھہ امدادی فعل [چھہ] حذف کرنہ آمت یمہ کنۍ [پیوان] لفظ نون چھہ درامت۔ دویمس مصرعس منز چھیہ گرامرچ سۅ حالت ورتاونہ آمژ یتھ منز سوال تہِ چھہ، تمنا تہِ چھیہ تہ حسرت تہِ۔

جایہ سیتۍ چھہ وقت تہ وقتہ سیتۍ چھیہ جاے۔ یمن دۅشونی ہندس اتھس منز چھہ انسان مجبور۔ گۅڈنکس مصرعس منز چھہ جایہ ہند متعلق فعل [گٹہِ] دورِرک تہ دویمس منز وقتک متعلق فعل [اکہ لٹہِ] چھونرک احساس وۅتلاوان۔ شاعرس چھہ معلوم زِ جایہ ہنزِ علیحدگی منز ہیکہ صرف گاہ پیتھ تہ وقتہ کس یک جہتی بہاوس منز چھہ اکی لٹہِ یُن گژھن ممکن۔

یہ شعر چھہ نہ صرف موسیقی تہ لسانی ورتاو بلکہ گۅڈنکۍ سے مصرعس منز اکھ استعارہ قایم کران۔ اکھ معمولی شاعر ونہِ ہے "چانی یاد چھیہ یوان” مگر گٹہِ منز گاہ پیون چھہ یاد تہِ، خواب تہِ، کُنیر تہِ، زون تہِ، خلوت تہِ، جلوہ تہِ، بے ثباتی تہِ، وۅمید تہِ غرض سٲری امکانات پانس منز شرپراوان۔ امہ شعرہ کہ گۅڈنکہ مصرعک خیال چھہ زِ گاش چھہ گٹۍ سے منز نون نیران۔ امچ قدر چھیہ انہِ گٹۍ سے منز۔ یمن ہند وجود چھہ اکھ اکۍ سندِ سیتی۔ شعرک کردار چھہ پانس رٲژ سیتۍ (انہِ گٹس) تہ پننس معشوقس زونہِ سیتۍ (گاشس) مشابہت دوان تہ یہ امکان تہِ پیدہ کران زِ انہِ گوٹ چھہ گاشچ کمی تہ یہ کمی چھیہ شعری کردار سندِ خاطرہ ناقابل برداشت۔ یہ خیال چھہ رسول میر سندس یتھ مصرعس منز تہِ:

متہِ میانہِ مہ رۅخسارہ وچھہتھ بہ گٹے لو