شعری فارمہِ ہنز فنی تنظیم

رحمن راہی سنز اکھ کتاب چھیہ "شعر شناسی” یتھ منز کاشرین بآتن پیٹھ الگ الگ تنقیدی تبصرہ لیکھنہ چھہِ آمتۍ۔ تنقیدی تبصرہ کس ناوس پیٹھ چھہ اکثر بٲتن ہند معنی تفصیلہ سان بیان کرنہ آمت۔ اتہِ نس چھہ سوال پیدہ گژھان شعر شناسی کتھ ونو؟ شعرن ہند معنی بیان کرن یودوے اکھ بنیادی قدم ہیکہِ ٲستھ، کیا شعر شناسی چھا شعرن ہند معنی بیان کرنس تامے محدود؟ یم کاشرۍ بٲتھ کتابہِ منز شامل چھہِ تم چھہِ زیادہ تر لوکہ بٲتھ یعنی تم چھہِ نہ غالب سندۍ خیال بند شعر زِ تشریح ہنز پییکھ ضرورت۔ نہ چھہ یمن منز کانہہ مشکل لفظ یا تلمیحہ یمن ہنز وضاحت ضروری بنہِ۔ یہ کتھ چھیہ اہم تہ یمیک احساس اتھ کتابہِ منز بالکل چھہ نہ گژھان چھیہ یہ زِ لکہ بٲتن ہنز شعریت چھیہ نہ تمن منز موجود خیالن اندر۔ مثالہ پاٹھۍ نمون اسۍ اکھ لوکہ بٲتھ یُس اتھ کتابہِ منز شامل چھہ تہ وچھو زِ راہی کتھہ پاٹھۍ چھہ اتھ بٲتس پران۔ گۅڈنیتھ کرون یہ بٲتھ تتھے پاٹھۍ درج یتھہ پاٹھۍ یہ اتھ کتابہِ منز چھہ:

ہن ہن چھم لولہ چانہِ بٲرتھ
زۅلہ چھیم نو سۅندٲرے سۅندرے

تیر مژگاں دتۍ تھم دٲرتھ
گٲمہ جگرس پنجرے پٲنجرے
دٲدۍ لد چھس کوت ہیکہ لٲرتھ
زۅلہ چھیم نو سۅندٲرے سۅندرے

وژھہِ وٲنجہِ ہاوے مژرٲوتھ
پہۍ پن زٲن ہرٲیو ہریو
مژھہِ مژھ بند زن گژھے لٲرتھ
زۅلہ چھیم نو سۅندٲرے سۅندرے

گچھہ کُٹھہِ نے تھاوے وتھرٲوتھ
لچھہ ناویو مندورے سانہِ بیہہ
اچھہ دٲر زن روزے پٲرٲوتھ
زۅلہ چھیم نو سۅندٲرے سۅندرے

لالہ گومے باغہ منزہ نیرتھ
پوش لاگٲس گۅندٲرے گۅندرے
کینہہ نہ منگہ سے ییم نا پھیرتھ
زۅلہ چھیم نو سۅندٲرے سۅندرے

پانژن شین صفحن ہندس تبصرس منز چھہ راہی معنی بیان کرنہ علاوہ زہ کتھ بٲتس متعلق ونان۔ اکھ امہ کس قافیس متعلق تہ بیاکھ امہ کین بندن ہنزِ ترتیبہِ متعلق، سہ تہِ تمن منز بیان کرنہ آمتین وٲرۍ داتن ہندِ منطقہ کہ تعلقہ۔
وچھو وۅنۍ راہی کیا چھہ فرماوان:

ss

"زندگی ہند کن تہ کیول مدعا چھہ تس وۅنۍ مدنوارس سیتۍ اکھ بے پھروک میل۔ مگر یہ روایتی موضوع یمہ آیہ ورتاونہ آمت چھہ سہ ورتاو چھہ تیوت خۅش آہنگ تہ بے شونک زِ بوزن وٲلس زن چھیہ مٲنتھر لگان تہ تس چھہ نہ بٲتس منز موجود کینژن فنی خامی ین کن تہِ سہل سہل ظۅن گژھان۔” (صرف چھہ ونان "یمہ آیہ ورتاونہ آمت چھہ”۔ یہ چھہ نہ ہاوان زِ کمہ آیہ چھہ ورتاونہ آمت۔)

بہرحال، گویا راہی یس چھیہ اتھ بٲتس منز فنی خامی نظرِ گژھان۔ وضاحت چھہ کران:

"بٲتس منز ورتاونہ آمتۍ قافیہ چھہِ امچ ٹاکارہ مثال۔ ہرگاہ قافیہ بندی ہندین کلاسیکل اصولن کن گژھو تیلہِ زن گژھۍ نہ مثالے دٲرتھ تہ لٲرتھ ہوین لفظن سیتۍ نیرتھ، پٲرٲوتھ ہوۍ لفظ ہم قافیہ گنزراونہ ینۍ۔”

مگر سیتی چھہ ونان اتھ بٲتس "منز باونہ آمتۍ جذبات چھہِ تیتۍ وتشل زِ یہ فنی بے قاعدگی چھیہ نہ کانہہ عیب باسان۔” حقیقت چھیہ یہ زِ فنی خامی چھیہ فنی خامی تہ کنہِ تہ صورتس منز ییہ یہ عیب گنزراونہ یوت تام نہ امیک کانہہ جواز یا ضرورت یا مجبوری آسہِ۔ (یم وتشل جذبات چھہ تمام لوکہ شاعری منز، اتھ منز کیا خاص کتھ چھیہ یمہ کنۍ قافیس کن ظۅن چھہ نہ گژھان، تہِ گوژھ ونن۔)

اکہ طرفہ چھہ ونان زِ یہ چھیہ فنی خامی تہ بییہ طرفہ چھہ ونان یہ چھہ نہ عیب، وجہ چھہ بیان کران ز "بوزن وول چھہ نہ اتھ ظۅنسے گژھان۔ میہ وون بوزن وول۔ پرن والۍ سنز کٔر نہ میہ کتھ تکیازِ گیون بٲتن گژھہِ نہ چھٲپی نظمن ہنز نظر کرنۍ۔”

گویا اگر نہ اتھ اچھو سیتۍ وچھو، قافیچ خامی چھیہ نہ محسوس گژھان۔ مگر راہی چھہ نہ اتھ بٲتس اچھو سیتۍ تہِ سنان، بوزتھ چھہ نہ سوالے۔ گۅڑنچی کتھ چھیہ یہ زِ بٲتھ چھہ تتھ ہیتس (فارمہِ) منز یتھ اسۍ وژن ونان چھہِ۔ یہ ژینن چھہ ضروری۔ راہی چھہ اتھ بٲتھ ؤنتھ امہ چہ فارمہ نظر انداز کران حالانکہ روایتی شاعری منز چھیہ فارم اہم۔ بٲتھ چھیہ نہ کانہہ شعری ہیت، نہ لفظ منظومہ یُس راہی اکثر ورتاوان چھہ۔ اگر امہ بٲتچ ہیت مدنظر روزِ، امچ تنظیم تہِ ییہ برونہہ کن۔ فن چھہ فارم ورتاونک طریقہ تہ سلیقہ۔ یوت تام نہ فارم بدِ ییہ کڈنہ، فنچ کتھ کتھہ پاٹھۍ سپدِ۔ قافین منز بے قاعدگی وچھنک وجہ چھہ یہ زِ راہی چھہ اتھ بٲتس نظمہ ہندۍ پاٹھۍ پران تہ ہیرہ پیٹھہ بۅن تام کنے قافیہ تصور کران۔ دویم غلطی یۅس راہی کران چھہ، سۅ چھیہ یہ زِ سہ چھہ بٲتہ کین قافین "قافیہ بندی ہندین کلاسیکل اصولن” ہنزِ نظرِ وچھان؟ کم کلاسیکل اصول؟ تہ چھیہ نہ پتاہ۔ دراصل چھہ تس برونہہ کنہِ غزلہ کین قافین ہنز اصول بندی۔ حالانکہ قافیہ چھہِ غزلہ علاوہ مثنوی ین منز تہِ ورتاونہ آمتۍ۔ تم گژھن وچھنۍ تہ پتہ گژھہِ کتھ کرنۍ۔

وژنس ہیکن الگ الگ بندن منز الگ الگ قافیہ یِتھ۔ اتھ بٲتس پیٹھ اگر سرسری نظر تہِ تراوو، الگ الگ قافیہ نیرن ننۍ۔ پریتھ بند کس گۅڈنکس تہ تریمس مصرعس چھہ کنے قافیہ۔ الگ الگ بندن چھہ الگ الگ قافیہ۔ مگر راہی چھہ اتھ ہیرہ پیٹھہ بۅن تام اکوے قافیہ زٲنتھ پران۔ حالانکہ

گۅڈنکس بندس چھہ /دٲرتھ/ تہ /لٲرتھ/ قافیہ۔
دویمس بندس چھہ /مژرٲوتھ/ تہ لٲرتھ/ قافیہ۔
تریمس بندس چھہ /وتھرٲوتھ/ تہ پٲرٲوتھ/ قافیہ۔
ژورمس بندس چھہ /نیرتھ/ تہ /پھیرتھ/ قافیہ۔

قافیک تعریف کیا چھہ؟ کتابی اصطلاحن ہندس گھن چکرس منز گژھنہ ورٲے، تکرار تہ تنوع۔ یوہے چھہ قافیک اصول۔ لفظہ چین ہشن آوازن ہند تکرار۔ تکراری آوازِ برونہہ ینہ واجنہِ آوازِ ہند تنوع۔ مثلا گۅڈنکہ بند کین قافین منز چھہ تکراری حصہ /ٲرتھ/ تہ تنوع وول حصہ چھہ /د/ تہ /ل/۔

وچھو وۅنۍ دویمہ بندک قافیہ امی اصولہ مطابق۔ تکراری حصہ چھہ /اِتھ/ (یعنی زیر تہ تھ) تہ متنوع حصہ چھہ /و/ تہ /ر/۔

ژورمہِ بندک قافیہ چھہ تکراری حصہ /یرتھ/ تہ متنوع حصہ /ن/ تہ /پھ/۔

تریمس بندس چھہ نہ قافیہ امہ اصولہ کنۍ مکمل پاٹھۍ کارگر، مگر اگر گۅڈنیک لفظ زیٹھراوون تہ /وتھرٲوتھ/ بدلہ /وتھٲرٲوتھ/ پرون (یہ چھہ بقول راہی گیون بٲتھ)، یہ قافیہ تہِ چھہ صحیح۔ /ٲرٲوتھ/ چھہ تکراری حصہ تہ /تھ/ تہ /پ/ متنوع حصہ۔ راہی ییلہ یمن بٲتن منز اکثر لفظ زیٹھراوان چھہ (مثلا پوش لاگس بدلہ پوش لاگٲس، بٔرتھ بدلہ بٲرتھ)، یہ لفظ کیازِ ہیکون نہ زیٹھرٲوتھ /وتھرٲوتھ/ بدلہ /وتھٲرٲوتھ/ پٔرتھ؟ بیاکھ کتھ چھیہ یہ زِ یم بٲتھ چھہ سینہ بہ سینہ پکان تہ یمن ہندۍ لفظ تہ بند تام چھہ تبدیل سپدۍ متۍ۔ امہ بٲتک یہ بند تہِ چھہ باسان اتھ جوڑنہ آمت۔ ثبوت ییہ برونہہ کن۔

کاشرِ لکہ شاعری منز کمہِ کشادگی سان چھہ قافیہ ورتاونہ آمت، تمیک اندازہ گژھہ "شعر شناسی” ہندس مصنفس میانہِ کھوتہ زیادہ آسن۔ مثالہ خاطرہ وچھون حبہ خاتونہِ ہند یہ وژن:

پھۅلہ ونہِ زیٹھے چھے میون سالو
لالو از وۅلو مالین میون

اتھ وژنس منزچھہِ یم لفظ ہم قافیہ گنڈنہ آمتۍ:

سالو، شولو، ڈانبلو، ڈلو، بلبلو، للو، لالو، ازلو، پِلو، حالو، مثالو

یتھے پاٹھۍ حبہ خوتونہِ ہندے بیاکھ وژن:

وار چھم نہ میلنس وٲروِ چھس گرے
وۅں پراریو پوشہِ تھرے تل

اتھ منز چھہ پھرے تہ کرے لفظن سیتۍ دارے گنڈنہ آمت۔ بییس پاٹھس منز پھرے تہ کرے لفظن سیتۍ بلے گنڈنہ آمت۔

بییس وژنس منز:
کاوۍ وہیونم ارۍ ننہِ نہے
از ییہ یار بہ ناوسے

نہے لفظس سیتۍ عنبرے تہ روستِس لفظس سیتۍ لٔجِس گنڈنہ آمت۔

بیاکھ مشہور وژن چھہ:
ژہ کمیو سۅنہِ میانہِ برم دتھ نیونکھو
ژیہ کہیو گٔیی میانۍ دے

اتھ منز چھہ تریمس تریمس مصرعس منز اندس پیٹھ قافیہ یوان۔ یم لفظ چھہ ہم قافیہ ماننہ آمتۍ:
یوان، پاوان، ہاران، چھاوان، شہلاوان، مازان، یوان

گویا کاشرِ لکہ شاعری ہنز قافیہ بندی چھیہ نہ اردو تہ فارسی غزلہ چہ "کلاسیکل قافیہ بندی” مطابق۔

زیر بحث بٲتک فنی زاوۍ جار چھہ یہ زِ بندن منز الگ الگ قافیہ ورتٲوتھ تہِ چھہ سارنے قافین ہند آہنگ ہیوے تھٲونہ آمت۔ وچھو امہ بٲتک بیاکھ فنی پہلو یس راہی بالکل نظر انداز چھہ کران بلکہ یتھ کن تسنز نظر چھیہ نہ گمژے۔

گۅڈنکہ تہ تریمہ مصرعہ کہ قافیہ علاوہ چھہ دویمس دویمس مصرعس منز تہِ قافیہ اننہ آمت۔ مثلا سۅندٲرے سۅندرے، گۅندٲرے گۅندرے، بیترِ۔ اتھ قافیس پیٹھ تہِ ہیکہِ دھوکہ گژھتھ زِ یہ چھہ وژنس منز ہیرہ بۅن کنے، حالانکہ حقیقت چھیہ یہ زِ یہ قافیہ چھہ دویمہ دویمہ مصرعہ کین اکھ اکس سیتۍ ینہ والین لفظن منز پانوانۍ قایم۔ یہ چھیہ امہ بٲتچ فنی خوبصورتی۔ یہ قافیہ چھہ متنوع لفظہ تکرارس پیٹھ مشتمل۔ سۅندٲرے/سۅندرے، ہرٲیو/ہریو، گۅندٲرے/گۅندرے۔ یمن لفظن پیٹھ نظر ترٲوتھ چھہ پیٹرن (ترتیب) نون نیران۔ گۅڈنکس لفظس منز چھہ دویمہ لفظک مصوتہ /زبر/ زیٹھرٲوتھ /ٲ/ بناونہ آمت۔ یہ پیٹرن وچھتھ ہیکو اسۍ ونتھ زِ راہی چھہ یہ مصرعہ غلط نقل کران:

گٲمہ جگرس پنجرے پٲنجرے

نہ صرف چھہ راہی لفظ اکھ اکۍ سنزِ جایہ لیکھان بلکہ چھہ سہ زیوٹھ مصوتہ غلط جایہ تھاوان۔ پنجٲرے بدلہ چھہ پٲنجرے دوان۔ وجہ یہ زِ بٲتہ کین لفظن تہ قافین ہنز کمپلیکس تنظیم چھیہ نہ تس درینٹھی آمژ۔ صحیح مصرعہ گژھہِ آسن:

گٲمہ جگرس پنجٲرے پنجرے

دویمس دویمس مصرعس منز چھہ لفظن ہند یہ التزام قایم سواے تریمس بندس منز یتھ منز یتھہ پاٹھۍ پیٹھہ وننہ آو گۅڈنکس تہ تریمس مصرعس منز قافیہ تہِ کارگر چھہ نہ۔ صاف چھہ زِ یا تہ چھیہ زبانۍ روایژ منز اتھ بندس تبدیلی سپزمژ نتہ چھہ یہ بند جوڑنہ آمت۔ یمۍ شاعرن بٲتس منز ییژاہ پیچیدہ تنظیم ورتٲومژ آسہِ تس آسہِ ہے نا قافیچ فنی خامی دور کرنس کن کانہہ ظۅن گومت؟

ٲخرس پیٹھ فن چھہ فارمہ ہندس ورتاوس منز، لفظن ہندس ورتاوس منز، خیالاتن ہندس ورتاوس منز (خیالن منز نہ بلکہ تہندس ورتاوس منز)، گۅڈنچین دۅن صورتن منز چھہ امہ بٲتک فن ظاہر۔ راہی چھہ صرف معنی بیان کران یُس پریتھ کٲنسہِ ہندِ خاطرہ ٹاکارہ چھہ تہ اکھ موضوعی یا شخصی کارگزاری چھیہ۔ لہذا چھہ نہ تہنزِ معنی بیانی پیٹھ میہ کانہہ اعتراض۔ میون یہ پوسٹ سمجھنہ خاطرہ پٔریو "شعر شناسی” منز امہِ بٲتک تبصرہ صفحہ 182 پیٹھہ186 تام۔

امہ وژنہ کس فنی پہلوس پیٹھ راہی سند اعتراض چھہ بے معنی بلکہ چھہ نہ امیک فنے تس درینٹھۍ آمت۔

بٲتہ کس ترتیبس متعلق چھہ راہی ونان زِٲخری بند چھہ "ٲخرس پیٹھ گیونہ بجایہ منزے پیش کرنہ یوان۔” امہ پتہ چھہ ونان زِ "منطقی حسابہ اگر وچھو تیلہِ گژھہِ ٲخرک یوہے بند زنجورِ ہند گۅڈنیک کور آسن مگر شاعری منز چھیہ منطقی ترتیبہِ کھوتہ زیادہ جذباتی ترتیبے کارفرما آسان۔” یہ چھہ نہ ونان زِ یہ جذباتی ترتیب کتہِ آیہ۔ اگر بٲتھ اکہِ ترتیبہ گیونہ یوان چھہ، راہی کیازِ اتھ پننۍ ترتیب دِتھ "حذباتی ترتیب” ناو دوان؟

یہ بٲتھ چھہ امین کاملن تہِ "لولہ نغمہ” ناوۍ پننہِ کتابہِ منز دیتمت۔ تمۍ چھہ تمی ترتیبہِ یہ بٲتھ دیتمت یمہ ترتیبہِ یہ گیونہ یوان چھہ۔ راہی سند دیتمت ٲخری بند چھہ کامل سنزِ ترتیبہِ منز بٲتک گۅڈنیک بند۔ کامل چھہ نہ راہی سند دیتمت گۅڈنیک بند دوانے۔ تمۍ چھہِ ترییے بند دتۍ متۍ۔ ممکن چھہ کاملس آسہِ یہ بند پیومت نتہ ما آسین نہ یہ علاوہ بند گیونس منز بوزمت۔

مہجور سندس مقبرس پیٹھ زہ نظمہ

مہجور سندس مقبرس پیٹھ وننہ آمژہ رحمن راہی تہ غلام نبی خیال سنزہ نظمہ چھیہ میہ برونہہ کنہِ۔ راہی سنز نظم "کنۍ کتھ” تہ خیال سنز نظم "مہجورن مزار”۔ فرق چھیہ یہ زِ خیال چھہ پننہِ نظمہِ منز مہجور سنز ویران قبرہ ہنز حالت وچھتھ پننۍ نظم ونان تہ راہی چھہ مہجور سنز قبر شیرنہ چہ تقریبہِ منز شریک سپدتھ پننۍ نظم ونان۔ مختلف موقعہ ٲستھ تہِ چھہ یمن منز واریاہ ہشر۔ ممکن چھہ اکھ آسہِ بیاکھ ذہنس منز تھٲوتھ وننہ آمژ، کۅس نظم آیہ گۅڈہ تمیک فصیلہ کرن کاشرِ ادبکۍ تواریخ دان (اگر چھہ کانہہ، ٹڈ گرۍ چھہ واریاہ) مگر سۅ کتھ چھیہ نہ تیژ اہم تہِ۔

راہی سنز نظم چھیہ اکھ "نثری”، صحافتی تہ عمومی بیان یُس موزون تہ قافیہ بند کرنہ آمت چھہ۔ یہ چھیہ نہ کنہِ صورژ منز نظم بنان۔ اتھ نظمہ منز وننہ آمژ کتھ چھیہ نہ موزون کلام بننس لایق تہِ۔ میہ چھہ تعجب راہی ین کیا سوچتھ چھیہ یہ موزون کلامی کرمژ؟ 50 پیٹھۍ شعرن منز چھہ اکھ سیٹھا معمولی تہ سطحی کتھ وننہ آمژ یمہ خاطرہ اکھ نثری نوٹ یا رائٹ اپ موزون روزہا۔ موزونے اوت نہ بلکہ کارگر تہِ۔ تمام شعر چھہ سیٹھا سطحی زبان تہ خیالن ہند ورتاو۔ مثلا

ہے بایو کتھ بوزو سا
بانبر کیا چھو روزو سا

بہ تہِ چھس آمت سالے یور
مجلس موکلہِ تہ تراوو دور

تلہ سا بوزو کیا چھہ ونان
لاوڈ سپیکر مۅختہ چھکان

اتھ نظمہ مقابلہ چھیہ خیال سنز نظم تتھ منز پیش کرنہ آمژِ کتھہِ ہندِ حسنہ کنۍ شعری حسن تہِ پیدہ کران۔ خیال سنز نظم چھیہ راہی سندین 50 ہن شعرن مقابلہ 5 ژن شعرن ہنز نظم یۅس اکس سیٹھا فکر انگیز نوٹس پیٹھ ختم چھیہ گژھان:

مشکہ نٲوتھ پانہ گل یمہِ پننہ گلزارکۍ دۅہے
ترووہکھ سرِ راہ کاشرۍ ٲسۍ پردارکۍ دۅہے

نہ صرف چھیہ ظاہری شکلہِ منز خیال سنز نظم ارتکاز پیش کران بلکہ چھیہ تمۍ سنزِ کتھہِ منز تہِ احساس تہ کیفیت کہ لحاظہ اثرانگیزی۔

نظمن ہند ہشر چھہ یتھ کتھہِ منز تہِ زِ ییتہ مہجور سنز قبر وچھتھ خیالس مغلن ہنزِ ملکہ نور جہانس کن منسوب فارسی شعر یاد پیوان چھہ، راہی یس چھہ نند ریوش سند اکھ مصرعہ یاد پیوان۔ دۅشونی نظمن منز مشہور شعر یاد کٔرتھ تمن ہندِ ذریعہ پننہِ کتھہِ ڈۅکھ دین چھہ اہم۔

راہی سنز نظم چھیہ اکھ منافقانہ سیاسی نظم یمیک ادبی مۅل شک آور چھہ ییلہ زن خیال سنزِ نظمہِ منز جذبچ نفاست موجود چھیہ۔

ممکن چھہ میانہِ یمہ نوٹہ کہ بہانہ پرن دوس یمن دۅن شاعرن ہنزہ یم نظمہ۔

کینہہ دلچسپ واقعہ

مژکری

جوانی ہندین ایامن منز ییلہ کانہہ دوست کنہِ محفلہِ منزسگریٹ ڈبۍ کھولان اوس، سۅ ٲس اکۍ سے منٹس منز خالی گژھان۔ واریاہن اوس محفلن منز سگریٹ ڈبۍ کھولنس کانپھ مگر ٹیٹھ چھیہ ٹیٹھ، یہ کیتس کالس کرِ ژیڈ۔

ہردے کول بھارتی صابن چھہ میہ اکھ واقعہ بوزنوومت۔ دوپن راہی صابن کوڈ ڈبہِ منزہ اکھ سگریٹ تہ ڈبۍ دژن دروازس کن دٲرتھ تہ وونن۔ "اکوے سگریٹ اوس بچوومت۔”

کامل صاب اوس تیلنگہ۔ یہ ووتھ تہ اننۍ یہ سگریٹ ڈبۍ تہ بٲگراونۍ امکۍ سگریٹ سارنے دوستن منز اکہ اکہ۔ راہی رود کیتھ تام ہیو وچھان۔

یمن ہنزِ مژکری ہنز شروعات ما چھیہ سگریٹ ڈبہِ پیٹھے شروع گمژ؟

نٲودس چھٹی

جمہِ پیٹھہ کس مشہور گایک کندن لال سہگلس متعلق چھہ میہ بوزمت زِ تمۍ اوس پورہ زندگی اکوے بوٹھ لوگمت۔ خبر یہ چھا پوز؟

مگر کامل صٲبس متعلق چھیہ یہ کتھ پوز زِ میہ چھہ نہ کامل صٲب زانہے ناید وانس کھسان وچھمت۔ کامل صٲب اوس مستس پتھ کن کنگو کران۔ میہ چھہ سہ واریاہ لٹہِ لۅکچہ قینچی سیتۍ پتۍ کنۍ پانے پنن مس کرپان وچھمت۔

چھو مبارک یہ انجمن سازی
حض کامل چھہ انجمن پانے

کامل سند مطالعہ

کامل صابس چھہِ واریاہ ادیب عالم ونان۔ مگر میہ آو نہ از تام سمجھ زِ یہ علم کتہ اوس امس یوان؟

میہ چھہ نہ کامل صٲب گھرس اندر کنہِ کتابہِ ہند مطالہ کران وچھمت۔ سٲنس گھرس منز ٲس نہ خاص کر انگریزی ادبس متعلق کانہہ کتاب۔ صرف چھیہ میہ زہ تریہ کتابہ نظرِ گمژہ۔ ایسفس فیبلز تہ براون سند فارسی گرامر تہ عروضس پیٹھ داہن وہن ورقن ہنز اخلاق دہلوی سنز کتاب۔ یاتہ چھہ کاملن پنن مطالعہ نوجوانی ہندین دۅہن منز کورمت، نتہ چھہ سہ اکاڈمی منزے یہ کار کران اوسمت۔ کامل صٲبن چھہ افسانہ لیکھن انگریزی ادیب اوہنری یس نش ہیوچھمت، مگر سانہِ گھرِ ٲس نہ کانہہ خاص کر انگریزی یا اردو ادبچ کتاب ماسواے غالب تہ اقبال۔

کامل صابن چھہ نہ پننین تحریرن منز کٲنسہِ انگریزی ادیب سند حوالہ دیتمت۔

کتابہ کیمۍ

کامل صٲبس نش آسہ کاشرین ادیبن ہنزہ واریاہ کتابہ۔ ساری آسہنس پننۍ پننۍ کتاب دوان۔ یم کتابہ آسہ سٲنس دیوان خانس منز اکس بجہ المارِ اندر اکس اکھ پیٹھ۔ بہ اوسس اکثر بہ المارۍ کھولان تہ کانہہ کانہہ کتاب ورق گردانی خاطرہ کڈان۔

یمن کتابن وتھۍ کیمۍ۔ میانہِ ماجہ دوپ امہ ادبہ سیتۍ چھہ گھرس گۅڈے شکس آمت، وۅنۍ ٲسیا یم کاغذ کیمۍ باقی۔ تمو کور فیصلہ زِ یم کتابہ ژھنووکھ ترٲوتھ۔ کامل صابس چلیوو نہ کینہہ۔ شاید ووننکھ ساریۍ نہ، کانہہ کانہہ تھٲوو، مگر تم کتابہ دژہ شکیل الرحمانن محلہ کس اکس وٲنس مفتے کنہ پونسن، پتاہ چھم نہ۔

تیلہ کالہِ اوس تموکھ کتابہ ورقن منز کننہ یوان۔ از تہِ آسہِ۔ تمٲکس بلایہ، مگر یم ورق ٲسۍ مۅللۍ آسان، لوکن ہندس علمس منز اوس (میٲنس تہِ) یمو سیتۍ تہِ سیٹھا اضافہ سپدان۔

فروعی معاملہ

1961 ٹھس دوران وننہ آمژن دۅن نظمن ہند مطالعہ چھہ سیٹھا دلچسپ۔ اکھ کامل سنز “نیتھہ ننۍ معنی” تہ بیاکھ راہی سنز “ریہہ تہ رقص”۔ مگر میہ چھہ نہ ییتہِ نس تحسین تہ تنقید کہ لحاظہ یہند تقابلی مطالعہ مقصد۔

دوشوے نظمہ چھیہ یمن شاعرن ہنزہ اہم نظمہ، خاص کر تمہ زمانہ چہ۔ دۅشوے نظمہ چھیہ اکۍ سے وزنس منز لیکھنہ آمژہ، کاملنۍ اختصارہ سان تہ راہینۍ زیچھر دِتھ۔ دوشوےنظمہ چھیہ غزلکۍ پاٹھۍ خودمختار شعرن پیٹھ مبنی، کاملنۍ زیادہ تہ راہی ینۍ کم۔ دۅشونی نظمن منز چھیہ کتھ لگ بھگ تہ جزوی طور ہشی وننہ آمژ، کاملنۍ طنزچ ژھاے ہیتھ، اشاراتی تہ رمزیہ اندازس منز تہ راہی سنز کتھ سیدِ سیود تہ بیانہ اندازس منز۔

وٲنسن پیٹھ کمۍ دوریر یوژھ
تمہ پژِ ما سنسارس زایہ
(کامل)

فرصت کم تے ہاوس کیتۍ
پرارُن گوو بلۍ ژاپن گار
(راہی)

یم ہشر چھہِ دلچسپ:

زلفن چانین ہند گون سایہ (کامل)
چانین زلفن مشکنۍ دار (راہی)

کمۍ دوپ ییتہ چھیہ نہ آدمۍ بوے
یم کیا ، ادہ چھا ساریۍ ژھایہ (کامل)
عرشس پیمژ آدمۍ ژھاے
فرشکۍ سجدے وارفتار (راہی)

کامل سنز نظم چھیہ گلریز رسالہ کس فروری 1961 شمارس منز چھپان تہ راہی سنز نظم چھیہ مارچ 1961 شمارس منز چھپان۔ دوشوے نظمہ چھیہ سیٹھا معمولی تبدیلی کرنہ پتہ یمن شاعرن ہنزن شعرہ سۅمبرنن منز شامل۔ کاملنۍ "لوہ تہ پروہ” (1966) تہ راہی سنز "سیاہ رودہ جرین منز” (1997)۔ راہی چھہ کتابہ منز اتھ نظمہ تلہ کنہِ اکتوبر 1960 تاریخ دوان۔ (میانہ خیالہ چھہ نادم تہ راہی سنزن کتابن منز واریاہن چیزن غلط تاریخ دتھ۔) اگر یہ نظم اکتوبر 1960 منز وننہ ٲس آمژ، راہی ما دیہ ہے تیلہِ گلریز کہ فروری 1961 شمارہ خاطرہ شرین ہند خاطرہ "نقلہ ژور” ہش بے معنی نظم یا نومبر 1960 کہ شمارہ خاطرہ امہ اہم نظمہِ بدلہ پننۍ اکھ روایتی غزل یمیک مطلع چھہ:

دلہ میانہِ بیہ سۅکھ روز مگر کرۍ ز نہ تنگ دل
شمعو ژیہ ہری سوز اگر شولہِ یہ محفل

اتھ غزلس چھہ راہی پننہِ کتابہِ منز تلہ کنہِ تاریخ جنوری 1960 لیکھان یعنی سہ چھہ تمۍ سندِ مطابق اکتوبر 1960 منز وننہ آمژ "ریہہ تہ رقص” ہش بہترین نظم اوک پاسے تھٲوتھ  نو ریتھ پرانۍ غزل چھپنہ خاطرہ دوان۔ یاتہ چھہ نہ راہی یس پننہِ نظمہِ ہنز اہمیت معلوم ٲسمژ نتہ چھہ سہ اتھ کھٹتھ تھاون ضروری زانان اوسمت۔ پیٹھمہِ غزلک اکھ دلچسپ طنزیہ شعر چھہ:

امہ سیتۍ اگر دور دلن سپدِ کدورت
مۅلوُن چھہ نہ شعرس تیلہِ گۅنمات چھہ کامل

یہ شعر چھہ راہی "سیاہ رودہ جرین منز” کتابہِ منز غزل شامل کرنہ وزِ ترٲوتھ ژھنان۔ کاملن کر چھیہ پننی نظم ونی مژ تہ چھیہ نہ پتاہ۔ مگر سہ چھہ یہ نظم "کاشر بزم” چہ فروری 1961 چہ میٹنگہِ منز پران۔ راہی تہِ اوس اتھ میٹنگہِ منز شامل۔ تمۍ پور نہ اتھ منز کانہہ چیز۔ امہ برونہہ چھیہ امہ بزمہِ ہنز میٹنگ جنوری 1961 منز گژھان یتھ منز راہی "فتح” تہ "معافی نامہ” پران چھہ۔  کامل سنزِ "نیتھہ ننۍ معنی” نظمہِ متعلق چھہ اختر محی الدین میٹنگہِ منز ونان زِ "اسہِ سارنے اوس یہ خیال رٔٹتھ زِ برونٹھ کن چھا لیکھنچ کانہہ وتھا کنہ نہ۔ اسہِ یا اوس شعرن ابہام گژھان نتہ ٲسۍ رومانیتس کن دوران۔ یہ نظم چھیہ رمز پیش کٔرتھ اکھ صحت مند وتھ ہاوان۔” راہی چھہ اتھ "نفیس نظم” ونان تہ مقبول (بقول مظفر عازم شاید مقبول حسین جرنلسٹ یس "مزدور” اخبار کڈان اوس) "یہ نظم چھیہ تمہِ اکہِ نوِ ترایہ ہند دسلابہ کران یتھ اشاریت ونان چھہِ۔” گویا راہی سنزِ "ریہہ تہ رقص” نظمہ ہند چھہ نہ کٲنسہِ پے پتاہ اوسمت۔ مگر راہی سنز نظم چھیہ رہہِ (10) ریتہ پتہ یکدم گلریز کس مارچ 1961 منز ننۍ نیران۔

رفیق راز چھہ میٲنس بلاگس (ونان کیہہ تام) پیٹھ اکس پوسٹس پیٹھ کمینٹ کران ونان "کاشرس منز اوس اکھ وبا پھٲلیومت۔ کانہہ اوس لیکھان کنہِ بحرس منز غزل تہ سیتی اوس دعوی کران زِ یہ بحر اون میۍ کاشرس منز۔ میہ لیوکھ 1975 منز اکھ غزل۔ (بہ چھس کنے تہ وسکھنا میہ نش خدایہ نیصف رآژ) بہ اوسس امہ وزِ یونورسٹی منز ایم اے کران۔ راہین بوز یہ غزل۔ واریاہو بوز یہ غزل۔ یہ غزل گیہ سیٹھا مقبول۔ میہ تہِ کور دعوی زِ ہتہ سا ببا یہ بحر اونوہ میہ گوڈنچہ لٹہِ کاشرس منز۔ کینژِ وہرۍ چھپیہ راہی صٲبنۍ غزل ( زہر ٲخر، شہر ٲخر) اتھۍ بحرس منز۔ غزل آیہ میانہِ غزلہ پتہ دۅیہ ترییہ وہرۍ لیکھنہ مگر تاریخ تروونس 1975 یعنی سے سنہ یتھ منز میہ پننۍ غزل لیچھمژ ٲس۔”

غلام نبی فراق چھہ "کاشر بزم” چہ جنوری 1961 چہ میٹنگہِ منز پننۍ نظم "بلبلس کن” پران یۅس اتھۍ ریتس منز وننہ ٲس آمژ (بحوال "صدا تہ سمندر”)، راہی چھہ پننہِ زہ نظمہ "فتح” تہ "معافی نامہ” پران، مگر ییلہ یمو منزہ دویم نظم چھپان چھیہ تاریخ چھہ اپریل 1958 دوان (بحوالہ "سیاہ رودہ جرین منز”)۔ تریہ وری پرون کلام۔

ممکن چھہ راہی سندۍ پننین نظمن تہ غزلن تلہ کنہِ دنہ آمتۍ تاریخ آسن صحیح۔ مگر واریاہن جاین چھہ شک جاے رٹان خاص کر ییلہ سہ رسالن منز کلام چھپاونہ خاطرہ سوزان چھہ تہ تمن تلہ کنہِ داہ داہ وری پرون تاریخ دوان چھہ۔ ممکن چھہ راہی آسہِ ہے نہ کنہِ وجہ کنۍ تازہ کلام نون کڈن یژھان یا کلام آسہِ ہے یوتاہ زیادہ زِ نوس آسہِ ہے ژیرۍ وٲرۍ یوان۔ نتہ آسہِ ہے مۅل ہرراونہ خاطرہ پتھ پتھ تھاوان۔ تحقیقچ شروعات چھیہ شکہ سیتۍ سپدان۔ وۅمید چھیہ کاشرِ شاعری ہندس تواریخس سیتۍ دلچسپی تھاون والۍ دوست کرن یمن معاملن کن غور۔ شفیع شوق سند "کاشرِ ادبک تواریخ” یودوے سیٹھا اہم کٲم چھیہ تہ سیٹھا فایدہ مند کٲم چھیہ، خاص کر طالب علمن ہندِ خاطرہ، سۅ چھیہ نہ یتھین معاملن واش کڈان یعنی تتھ منز چھہ تحقیق کم تہ تنقیدی تبصرہ زیادہ۔ کانہہ ونہِ یمن فروعی معاملن سنن گوو وقت راوراون مگر کنہِ تہ ادبک تواریخ چھہ نہ یمن معاملن کن توجہ کرنہ ورٲے مکمل۔ از چھہِ نہ اسۍ پننین پرانین شاعرن متعلق اپزو کتھو ورٲے کہنی زانان۔ حبہ خاتون چھیہ ارنہِ مال بنان تہ ارنہِ مال حبہ خاتون۔ ادبی تواریخ لیکھن وول اوس نہ کانہہ، ادبی تواریخ لیکھن وول چھہ نہ از تہِ کانہہ۔ مرغوب بانہالی چھہ اکس مضمونس منز کامل سنزِ "قصیدہ” نظمہِ کتابہِ اندر تلہ کنہِ دنہ آمتس 1970 تاریخس پیٹھ شک کٔرتھ لیکھان زِ "اتھ بعد زمانی پھیرس ہیکن پگہکۍ محقق پانے سام ہیتھ” حالانکہ یہ نظم چھیہ تمن برونہہ کنہِ نیب اکتوبر 1970 کس شمارس منز سرس چھپیمژ۔ "قصیدہ” ما اوس اکھ بیاکھ غزل یہ روزِ ہے نہ یاد۔ یتھ ادبی کمیونٹی یوتاہ مشرفہ آسہِ تہ ییژاہ لاتعلقی آسہِ، تتھ منز چھیہ ادبی مورخ سنز ضرورت زیادہ۔ کامل چھہ "یم میانۍ سخن” کتابہِ ہندس سرنامس منز لیکھان زِ "بٲتن الگ الگ تاریخ آسن چھہ نہ ضروری تکیازِ شاعری چھیہ نہ تٲریخواری مطٲبق مۅلون سپدان۔ وۅنۍ گوو فروعی معاملہ ونۍ راونس چھہِ کم کاسہِ مدد کران۔” کامل سنز کتھ چھیہ صحیح مگر حقیقت چھیہ یہ زِ یم فروعی معاملہ تہِ چھہِ اہم آسان۔

سیاہ رودہ جرین منز

rahi book
محمد یوسف ٹینگ چھہ رحمن راہی سنزِ کتابہِ ہندس اجراہس پیٹھ پننس مضمونس منز لفاظی اکتھ کن یم 10 نکتہ پیش کران:

(1) راہی اوس نوروز صبا کتابہِ منز اقبال تہ فیض ہوین اردو شاعرن ہندس اثرس تل آمت، نوِ شعرہ سۅمبرنہِ منز چھہ ایزواپاونڈ، فروغ فرخزاد، بیدل عظیم آبادی، ڈبلیو بی ییٹس تہ مرزا غالب نمودار سپدان۔

(2) یمن علاوہ چھہِ پننہِ زبانۍ ہندۍ معنوی ہم زلف لل دید، نندہ ریوش، حبہ خاتون تہ شمس فقیر اتھ کتابہِ منز ژھایہ گتۍ ماران۔

(3) نوِ کتابہِ ہنز شاعری چھیہ نہ بٲتھ بازی بلکہ لیکھمتہ پیٹھہ پرنچ تہ پرنچ، خلوتن منز پرنچ شاعری۔

(4) لل دید چھیہ کاشرِ شاعری ہندِ دویمہ ساسلہ کہ کاشرِ غزلک مطلع ونان تہ راہی چھہ امیک مقطع تحریر کران۔ سہ چھہ امہ علاوہ دویمہ ساسلہ چہ سخن سرایی ہند بہترین راش تہ چاش تریمہ ساسلہ کس سخن ورس تہ سخن فہمس برونہہ کنہِ تھاوان۔

(5) ٹینگ سندۍ کنۍ چھہ راہی نوِ ساسلیک مزازہ متعین کران تہ پیشن گویی چھہ کران زِ سہ ییہ تتھے پاٹھۍ پرنہ یتھہ پاٹھۍ لل دید پرنہ آے۔

(6) راہی سنزِ فن چہ تازہ نہجہ سیتۍ چھیہ کاشر سخن فہمی عام کاشرس نش دوریمژ، مگر پریتھ اہم زبانۍ منز چھہ elete اظہار تمہ زبانۍ ہنز توژھ تہ وس بنان۔

(7) راہی سنزِ شاعری منز چھہ واریاہ مصرعہ یمن ہنزہ صرژہ کاشرس شعرس عظمتک انعام عطا کران چھیہ۔

(8) راہی چھہ کاشریک زز لہجہ تہ رنیوومت ورتاو نوین خیالن موافق کرنہ خاطرہ زبان سازی کران۔

(9) امۍ سنزِ شاعری منز چھہِ لل دید، شمس فقیر تہ دیناناتھ نادم سندین پوت آلون ہندۍ نارہ بشتنگہ۔ مگر یمن سخن ورن ہنزہ صرژہ چھیہ وۅٹہ تلان تہ راہی سنزن صرژن منز چھہ سنبال تہ ٹھہراو۔

(10) سیاہ رودہ جرین کتابہِ گژھہِ کانہہ تھود انعامہ دنہ یُن۔ ونان چھہ گوژھس ترُن نوبل پرایز مگر پرواے چھہ نہ اکھ بوڈ انعامہ چھہ امۍ سندِ خاطرہ تیار۔
(پتہ تور اتھ سہ انعامہ)
یم نکتہ چھہِ امی ترتیبہ اتھ مقالس منز چکاونہ آمتۍ۔ یمن نکتن پیٹھ چھیہ کتھ کرنچ ضرورت۔ فی الحال چھہ سوال تۅہہ کژن نکتن سیتۍ چھہ اتفاق تہ کژن سیتۍ اختلاف، کنہ تہۍ چھو نہ یمن کتھن سنانے؟

ترنگرِ والین ہنز کاکۍ گی کِنہ لکہ شعریات؟

رینزس گیندم، رینزس گیندم
ببن اونم بازراے
شیشہ دارے پانے لویم
رم گیہ شیشس ہتے ہاے
بب ہے دپیم یہ کیا کورتھ
بہ ژھۅپہ ژھۅپے پھرس چاے

رحمن راہی چھہ "کاشرِ لکہ شاعری ہند تخلیقی کردار”  (مطبوعہ شیرازہ 6:29) مضمونس منز اتھ لکہ بٲتس تشریح کٔرتھ خبر کمن پیٹھ بیہ موقعہ یتھہ پاٹھۍ پننۍ ژکھ کڈان:

"کینہہ ترنگرِ والۍچھہِ یتھین نوزک لوہ پھیرین تہِ پٲترِس کھٲرتھ تولنچ کاکۍگی کران تہ گہے سکہ بند قافیہ بندی ہنز تہ گہے تارژہ تولچ کتھ تلان۔ اما تمن چھنا قدیم یونانین ہند یہ دوپ تہِ کنن گومت زِ وزن یا قافیہ چھہ نہ شاعری ہنزِ ٲڈرنہِ منز شامل۔ تہ مرزا غالبن یہ اعلان تہِ چھکھنا بوزمت زِ
 فریاد کی کویی لے نہیں ہے
نالہ پابند نے نہیں ہے۔”

اتھ جذباتی بیانس منز چھہ راہی قافیس تہ وزنس متعلق پننۍ نفرت ظاہر کران۔ افسوس چھہ یہ زِ امہِ لکہ بٲتہ چہ تشریح  منز چھہ سہ یوت آورنہ آمت زِ سہ  چھہ نہ اصل بٲتہ کس فارمس پیٹھ توجہ کٔرتھ ہیوکمت، نتہ زن گوژھ نہ سہ امہِ بٲتہ کہ حوالہ قافیہ تہ وزنہ کہ غیر ضروری آسنچ کتھ تُلن تکیازِ یوت تام قافیہ بندی ہند سوال چھہ، یہ بٲتھ چھہ ٹاکارہ پاٹھۍ پانہ ہیرہ پیٹھہ بۅن تام قافین منز غرق۔گۅڈنچی نظرِ چھہ امہ کس دویمس دویمس مصرعس منز غزلہ کی پاٹھۍ قافیہ ورتاونہ آمت: بازراے/ہاے/چاے (باقی وچھو برونہہ کن)۔ یوت تام وزنک سوال چھہ، اتھ منز چھہ ہیجلۍ (کاشر) وزن تہِ برابر پاٹھۍ ورتاونہ آمت۔ یعنی یمن دۅن چیزن راہی معترض چھہ تم دۅشوے چیز چھہِ امہِ بٲتہ چہ ٲڈرنہِ منز شامل۔

 

وزنچ ٲڈرن

1

2

3

4

5

6

7

8

رین

زن

گین

دم

رین

زس

گین

دم

ب

بن

او

نم

با

زہ

راے

 

شی

شہ

دا

رے

پا

نے

لو

یم

رم

گے

شی

شس

ہ

تے

ہاے

 

بب

ہے

د

پیم

یہ

کیا

کر

رت

بہ

ژھۅپ

ژھو

پے

پھِ

رس

چاے

 

یہ چھہ بنیادی طور ہیجلۍ وزن تہ اکثر بٲتن ہندۍ پاٹھۍ چھہِ اتھ منز گۅڈنکس گۅڈنکس مصرعس منز ٲٹھ (8) تہ دویمس دویمس مصرعس منز ستھ (7) ہیجلۍ۔ اکثر ہیجلۍ وزنن منز چھہ ہیجلین ہند تعداد اہم، تمن ہنز ترتیب نہ۔ ترتیب چھیہ تمن وزنن منز اہم یمن منز ژھۅٹین تہ زیٹھین ہیجلین ہنز فرق اہم چھیہ۔ کاشرس ہیجلۍ عروضس منز چھہِ ژھوٹۍ تہ زیٹھۍ ہیجلۍ اکوے قیمت تھاوان۔ زبر، زیر، پیش یا بییہ کانہہ اعراب وول اوک اچھری لفظ یا لفظک ٹکرہ مثلا /ب/چھہ اکھ ہیجل، زہ اچھرہ والۍ ٹکرہ یا لفظ مثلا/زس/ تہِ چھہ اکوے ہیجل، تریہ اچھری ٹکرہ یا لفظ مثلا /راے/تہِ چھہ اکوے ہیجل، تہ ژور اچھری ٹکرہ یا لفظ مثلا /ژھۅپ/ تہِ چھہ اکوے ہیجل۔ یمن سارنی ہیجلین چھہ کاشرس ہیجلۍ عروضس منز کُنے مۅل۔ فارسی عروضس منز چھہ یمن الگ الگ مۅل مقرر تکیازِ تتہِ چھیہ ژھۅٹین تہ زیٹھین ہیجلین ہنز ترتیب اہم۔

سانۍ شاعری چھیہ دنیا چہ زیادہ تر شاعری ہندۍ پاٹھۍ فارمچ شاعری لہذا چھہِ اتھ منز فارمہِ سیتۍ تعلق تھاون والۍ عنصر موجود یمن منز قافیہ تہ ردیف تہ وزن تہ مصرعہ تہ شعر تہ ووج تہ بند تہ صنف چھہِ۔ یمہِ ساتہ اسۍ یمن بٲتن پیٹھ قلم تُلو اسۍ کرو ضرور تمن عنصرن ہنز کتھ یمو مطابق یم وننہ آمتۍ چھہِ۔ تتھ منز چھہ نہ کانہہ گۅناہ! سۅ چھیہ سانۍ شعری روایت یۅس سانہِ تمام لکہ شاعری احاطہ کٔرتھ چھیہ۔

دویم کتھ چھیہ یہ زِ دنیاہ کہ کُنہِ تہ تمدنکۍ لکہ بٲتھ چھہ قافیہ تہ وزن ورتاوان چاہے سہ وزن کُنہِ تہ نظامس تحت آسہِ یا خالص متوازیتس parallelismپیٹھ دٔرتھ آسہِ۔ یہ چھیہ پاپیولر شعریات، اتھ کیا کرِ کلاسیکل یونانۍ تنقیدی اصول زِ شاعری خاطرہ چھہ نہ وزن تہ قافیہ ضروری۔ تم ٲسۍ شاعری بدلہ تمہ وقتہ منظوم ڈراما لیکھان یمہ کس سیاقس منز تمو یہ کتھ کرمژ چھیہ۔ شیکسیپر تہ چھہ ڈراما لیکھان مگر یتتہ نس تاثر ہرراون چھس آسان قافیہ تہِ چھہ ورتاوان۔

 

بے بنیاد شہادت

راہی چھہ اتھ بیانس منز طنزک لہجہ رٔٹتھ مزید ونان زِ کینژن "ترنگرِ والین” (خبر یہ کمن کُن چھہ اشارہ؟) چھیہ نہ خبر زِ قدیم یونانیو چھہِ نہ قافیہ تہ وزن شاعری ہنزِ ٲڈرنہِ منز شامل کرۍ متۍ۔ راہی یس چھہ نہ شاید یہ معلوم زِ وزن تہ قافیہ چھہِ نہ براہ راست شاعری بلکہ شعری فارمن یا روایژن ہندۍ لوازمات۔ اگر یونانین ہند یہ خیال چھہ زِ شاعری ہندِ خاطرہ چھہِ نہ وزن تہ قافیہ ضروری تمیک مطلب گوو نہ یہ زِ سۅ شاعری کیا چھیہ نہ شاعری یتھ منز وزن تہ قافیہ ورتاونہ آمتۍ چھہِ یا وزن تہ قافیہ ورتاون یا تمن ہنز کتھ کرُن کیا چھہ گناہ۔  بییہ چھہ نہ یہ ضروری زِ یونانین ہند دوپ کیا ییہ اچھ ؤٹتھ ماننہ تکیازِ یہ چھہ نہ کانہہ خدایی بیان۔ کلاسیکل یونانین پتہ چھہِ دنیاہچہ تقریبا تمام تر شاعری (یونانۍ ہیتھ) وزن تہ قافیہ ورتاومتۍ۔ اگر  کلاسیکل یونانین ہندس دٔپس منز مطلق حقیقت آسہِ ہے، دنیا ہس منز آسہ ہے نہ بجن بجن زبانن ہندیو شاعرو وزن تہ قافیہ ورتاوۍ متۍ۔ غزل یا بییہ کانہہ روایتی فارم، سون وژن تہ لکہ بٲتھ چھہِ قافیہ تہِ ورتاوان تہ وزن تہِ تکیازِ یم زہ چیز چھہِ باقی عناصرن سیتۍ رٔلتھ یمن فارمن ہنز تشکیل کران۔

راہی چھہ غالبن شعر دتھ یہ رعب تراونچ کوشش کران زِ غالب ہوۍ بڈۍ شاعرن تہِ چھہ اعلان کورمت زِ وزن تہ قافیہ چھہِ نہ شاعری ہندِ خاطرہ ضروری۔ حالانکہ غالب سندس شعرس چھہ نہ وزن تہ قافیہ کس بحثس سیتۍ کانہہ تعلق۔ فریاد تہ نالہ یم دۅشوے چیز چھہِ ناہموار تہ بیہ ربط تہ بیہ ضبط۔ فن چھہ بندش، چستی تہ تہذیب منگان ۔بقول اقبال:

تا تو بیدار شدی نالہ کشیدم ورنہ
عشق کاریست کہ بے آہ و فغاں نیز کنند

راہی یتھ شاعرانہ زبان ورتٲوتھ نوزک لوہ پھیرۍ ونان چھہ، تم لوہ پھیرۍ چھہِ نہ فریاد تہ نالہ یا بیہ وزن  کریکہ نادک نتیجہ۔ یمن لوہ پھیرین ہنز تہذیب چھیہ قافیہ بندی تہ وزنکے نتیجہ۔ اگر یہ پوز مانو زِ امہِ شعرہ نش چھہ غالبن مراد قافیہ تہ وزن، غالبن آسہِ ہے نہ تیلہ پانہ قافیہ بند تہ وزنہ پابند شاعری کرمژ، یعنی پننۍ تمام شاعری عروض چہ لیہ تہ نیہ پابند کٔرمژ۔ سہ گوژھ تیلہ وزنہ روس کریکہ ناد تُلن۔ راہی ین تہِ چھیہ پانہ پننۍ سٲرے غزلیہ شاعری تہ نظمن ہند اکھ حصہ اوترہ تام  قافیہ تہ وزنچ پابند کرمژ ۔ یعنی اگر پزۍ پاٹھۍ قافیہ تہ وزن ضروری ٲسۍ نہ تسندین غزلن منز کیازِ چھیہ یمن ہنز مکمل پابندی؟ راہی کیازِ کنۍ کتھ، ونہ وُن، خۅدایا بیترِ نظمہ راتھ تام ونان یمن منز وزنچ تہ قافیچ پابندی تس کرنۍ پیوان چھیہ۔ یہ سبق کیا تہ کس کیت؟ اگر کانہہ شخص زیوِ کُنہِ پزرچ حمایت تہ پرچار کرِ تہ عملا باہوش و حواس پزر پانہ نظر انداز کرِ، یعنی لوکن ونہِ قافیہ تہ وزن مہ ورتٲوو تکیازِ یم چھہِ نہ شاعری ہنزِ مولہ ماہیژ منز شامل مگر بییہ اندہ روزِ پننین غزلن تہ نظمن منز دۅشونی ہند ورتاو کران، تس شخژس کیا ونو؟

راہی یمہِ ساتہ تہِ پابند یا فارمل شاعری ہنز کتھ کران چھہ مثلا پیٹھم لکہ بٲتھ سہ چھہ اکثر قافیہ تہ وزنچ پاسداری کرن والین ملامت کران۔ کیازِ؟

 

قافیچ ٲڈرن

راہی چھہ اتھ بٲتس تشریح کٔرتھ ہاوان زِ اتھ بٲتس منز کٲژا تخلیقیت چھیہ۔ مگر تشریح علاوہ ٲس تتھ چیزس تہِ سننچ ضرورت یتھ امہِ بٲتہ کس ہیتس سیتۍ تعلق چھہ یعنی قافیہ بندی۔ افسوس چھہ زِ راہی چھہ بٲتس پیٹھ نظر تراونہ ورٲے (خیالی) ترنگرِ والین پیٹھ پننۍ ژکھ کڈان۔ امیک وجہ چھہ یہ تہِ زِ سہ چھہ معنی یسے منز بند گومت بٲتہ کین لفظن چھہ نہ سنیومت۔ قافیہ چہ کارسازی ورٲے کتھہ پاٹھۍ ہیکہ کانہہ نقاد یا پرن وول اتھ بٲتس لطف تُلتھ؟ یہ کتھ گژھہِ یاد تھاونۍ زِ لکہ شاعری منز چھیہ قافیہ بندی سیٹھا اہمیت۔ تہۍ وچھو زِ یتھ بٲتس منز تہِ چھہ قافیہ نہ صرف اندن پیٹھ بلکہ جایہ جایہ میلان۔ یمن لکہ بٲتن منز چھہ آہنگ، روانی تہ یاد تھاونچ قابلیت قافیہ بندی ہندی بدولت۔ اگر یمن لکہ بٲتن منز قافیہ تہ وزن ورتاونہ آسہ ہن نہ آمتۍ یم آسہ ہنے نہ سٲنس یاداشتس منز محفوظ رودۍ متۍ تہ  اسہِ تام واتۍ متۍ۔ لکہ شاعری ہنز ٲڈرنہِ منز چھہِ یم زہ چیز سرس۔  وچھو اتھ بٲتس منز کتھہ پاٹھۍ چھیہ قافین ہنز طومار۔ 27 ہن لفظن ہندس اتھ بٲتس منز 15 قافیہ آسنۍچھہ نہ اتفاق (یا ترنگرِ والین ہنز کاکۍگی) بلکہ تتھ شعریاتس کن اشارہ یمچ کارفرمایی اتھ شاعری منز چھیہ۔ یونانۍ شعریات ہیکہِ نہ سانین لکہ بٲتن پیٹھ چسپان سپدتھ۔  ترٲوو قافین پیٹھ نظر:

قافیہ 1:   رینزس/شیشس/پھِرس
قافیہ 2:   گیندم/ اونم/ لویم/ رُم/ دپیم
قافیہ 3:   راے/ ہاے/ چاے
قافیہ 4:   پانے/ہتے/ ہے/ ژھۅپے

یمو قافیو علاوہ چھہ اتھ بٲتس منزکینژن لفظن ہند تکرار تہِ موجود۔
رینزس /رینزس
 گیندم/گیندم
 ببن/بب
شیشہ/شیشس
 ژھۅپہ/ژھۅپے

مزید چھہ بٲتس منز آوازن ہند ہشر تہ تکرار تہِ قابل غور۔ گۅڈنکین دۅن مصرعن منز نون تہ کھنکھۍنون شییہ (6) لٹہِ تہ پتمین دۅن مصرعن منز /پ/آواز ژورِ (4) لٹہِ۔ یمو دۅیو آوازو علاوہ چھیہ/ر/ آواز تہِ بٲتس منز ستہِ (7) لٹہِ آمژ۔ یمن آوازن ہندِ تکرارہ سیتۍ چھہ بٲتہ کس آہنگس تہ روانی منز اضافہ گومت۔ یم دۅشوے عنصر لکہ بٲتن ہندِ خاطرہ اہم چھہِ۔ اسۍ ہیکو نہ تتھ شاعری منز وزن تہ قافیہ نظرانداز کٔرتھ یۅس تمہِ شعریات موجوب وننہ آسہِ آمژ یتھ منز یم لازم چھہِ۔ اتھ شاعری اگر یمن عنصرن ہندِ مۅکھہ گزگتی تہِ لگاونہ ییہ ناجایز چھہ نہ کینہہ۔

یتھ مضمونس منز اوس یتے ہاون زِ وزن تہ قافیہ چھہ پیٹھمہ لکہ بٲتہ چہ ٲڈرنہِ منز شامل تہ یمو ورٲے امہ بٲتک تصور کرُن بلکہ امچ تحسین کرنۍ تہِ ناممکن چھیہ۔ 

تۅہہ نش ما کٲنسہِ جواب؟

"بٲتن الگ الگ تاریخ آسن چھہ نہ ضروری تکیازِ شاعری چھیہ نہ تاریخواری مطابق
مۅلۅن سپدان۔ وۅنۍ گوو فروعی معاملہ ؤنراونس چھہِ کم کاسہِ مدد کران۔”
— امین کامل، سرنامہ ‘یم میانۍ سۅخن’

"شاعری چھیہ دورن منز لیکھنہ یوان، دۅہن تہ ؤرین منز نہ۔ مگر یہ تہِ گژھہِ
یاد تھاوُن زِ داہ ؤری تہِ ہیکہِ اکھ دور ٲستھ، خاص کر تیزی سان
بدلونس وقتس منز۔”
— منیب الرحمن

شفیع شوقن لیوکھ کاشرِ ادبک تواریخ یُس اکھ بوڈ کارنامہ چھہ۔ میہ چھہ امیک گۅڈنیک ایڈیشن وچھمت یتھ منز واریاہ خٲمیہ آسہ۔ تنہ پیٹھہ آے اتھ زہ تریہ ایڈیشن تہ میہ چھیہ وۅمید گۅڈنکہ ایڈیشن چہ ساریۍ حٲمیہ آسن درو سپزمژہ تکیازِ شوقس ٲس پانہ تمن خٲمین پیٹھ نظر۔  امہ تواریخ علاوہ چھیہ ضرورت زِ کاشرِ ادبہ کس جدید دورس پیٹھ، یُس 1960 پیٹھہ 1980 تام جاری رود، ییہ تواریخی کٲم کرنہ۔ یہ کٲم گوژھ یونیورسٹی ہند کانہہ طالب علم انجام دین۔ یہ ہیکہِ پی ایچ ڈی یک تہِ موضوع بٔنتھ۔ 

کمۍ کیا لیوکھ تہ کر لیوکھ، پتھ کُن لیکھۍ متین چیزن کر تہ کٲژا تبدیلی آیہ کرنہ یمن کتھن پیٹھ گوژھ تحقیق سپدن۔ ادبچ روایت چھیہ نہ ٹی ایس ایلیٹ، جیرالڈ مینلی ہاپکنز سنزہ کتھہ چکاونہ سیتۍ قایم گژھان، نہ چھیہ سۅ خالص کتابہ چھپاونہ سیتۍ قایم گژھان یوت تام نہ اتھ تمام کارکردگی اندۍ اندۍ اکھ ادبی کلچر کھڑا گژھہ،ِ یوت تام نہ یمن چیزن پیٹھ کتھ گژھہِ۔ کتھ چھہ نہ مطلب صرف تجزیہ تہ تنقیدی مضمون بلکہ لیکھن والین، تہنزِ زندگی، تہنزن کتابن، تہندس کلامس متعلق  پریتھ کونہ کتھ سپدِِ۔

سانین بزرگ ادیبن چھہِ ہمیشہ پننین چیزن غلط سنہ تلہ کنہِ دینک عادت اوسمت۔ کلیات مہجورس منز چھہ واریاہن چیز ن غلط سنہ دِتھ، دینا ناتھ نادم سنزِ کتابہِ منز چھہ واریاہن چیزن ٲنی مٲنی سنہ دِتھ۔ تس چھہ نہ یہِ تہ یاد روزان زِ امہ برونہہ ہے میہ اتھۍ چیزس اکھ سنہ دیت، از کتھہ پاٹھۍ دمس بیاکھ سنہ۔ رحمن راہی یس اوس عادت یہ زِ سہ یُس تہ چیز کنہِ رسالس سوزان اوس تتھ اوس شیہ ؤری، داہ ؤری پرون سنہ تلہ کنہِ دتھ تھاوان۔ زن اوس سہ پنن کلام دہن ؤرین پتھ تھٲوتھ پرانہِ شرابکۍ پاٹھۍ مارکس منز کڈان۔ یہ اوس سہ اکھ سوچتھ سمجتھ  گپلہ کران۔ امین کامل، مظفر عازم ہوین شاعرن اوس نہ یہ مسلے تکیازِ یم ٲسۍ سیتی کتابہ چھپاوان۔ کاملن چھپاوِ 1972 تام ژور شعرہ سۅمبرنہ، مظفر عازمن تہ چھپاوِ 1974 تام زہ سۅمبرنہ، مگر باقی شاعر رودۍ کلامہ پتھ کن تھاوان۔ وجہ اوس صاف یتھ پیٹھ بییہ کنہِ ساعتہ کتھ گژھہِ۔

نادم، فراق تہ راہی رودۍ گوش دوان حالانکہ کلچرل اکاڈمی ٲس یہند کلام چھپاونہ خاطرہ ہمیشہ تیار۔ ٲخرس پیٹھ نیہ یمو کنی کتابا چھپٲوتھ، یمن منز چیزن سنہ سیتۍ سیتۍ لیکھکھ چھہِ،  یم اکثر غلط چھہِ۔ یہند یہ وطیرہ وچھتھ ژٔٹ کاملن سلی کتھ۔ تمۍ چھپٲو نہ 1972 پتہ کانہہ کتاب بلکہ سپد سہ 1980 پتہ کاشرِ ادبی ماحول تہ کشیرِ ہندِ ماحولہ نش یوت بدظۅن زِ تمۍ کور شاعری ہند کارخانے بند۔ صرف لیچھن تم خاص نظمہ مثلا تٲے نامہ، حمد تہ لڈی شاہ بیترِ یمن منز تمۍ دراصل اتھ صورت حالس پیٹھ افسوس ظاہر کورمت چھہ۔ اکہ قسمکۍ مرثی۔ ییلہ کامل  2001 منز امریکہ کس چکرس پیٹھ آو اتی نیو میہ تسند سورے کلام تہ کورم جمع کتابہ ہندس صورتس منز۔ نیب رسالہ منزہ تہِ کوڈم قصیدہ تہ باقی نظمہ یم 1972 برونہہ چھپیمتۍ ٲسۍ مگر کاملس اوس نہ کنہِ کتابہ منز شامل کرنک موقعہ میولمت۔ امۍ سنزِ عدم دلچسپی کنۍ لگۍ اتھ کتابہ چھپاونس پانژھ شیہ ؤری۔ تہِ ٲس نہ تس وۅنۍ یہ کلام چھپاونس منز دلچسپی۔

rah

کامل چھہ کاشر ادب رسالس 1967 منز پنن تازہ غزل بحثہ خاطرہ سوزان:

بہار پوک نہ اگر چانہِ ترایہ گرایہ میہ کیا
گلالہ داغ جگر ہیتھ چھہ جایہ جایہ میہ کیا

راہی تہِ چھہ غزل سوزان تہ اتھ تلہ کنہِ لیکھان 1958۔ دہہِ وہرۍ پرون یہ غزل چھپاونک کیا مقصد چھہ اوسمت؟ دہن ؤرین اوس نا امۍ کانہہ نوو غزل وونمت؟ کنہِ یہ اوس تیتھ زبردست غزل یس نہ اگر چھپہِ ہے تہ نقصان گژھہِ ہے۔ وچھو غزل کیا اوس یُس دہہ وہرۍ چھپاون ضروری اوس:

بلۍ تہِ نو آو یہ رنگ حسن خیالس یارو
داغ تھاواں ہا وچھم سونت گلالس یارو

اگر یہ غزل پزۍ پاٹھۍ 1958 ہک اوس۔ راہی سند یہ 1967 منز چھپاوُن چھیہ مندچھ۔ 1967 منز اوس کاشرس منز تہِ دۅہ کتہِ کور ووتمت۔

کامل چھہ سوزان اتھۍ رسالس 1976 منز پننۍ زہ غزل:

سمے صدا چھہ ژہاں سنگرن جگر کس پتھ
گگن ہوا چھہ تلاں تارکن مژر کس پتھ

تہ

لکھ چھہِ پھیراں عجیب باوتھ ہیتھ
معنہ روستے حسیں عبارتھ ہیتھ

راہی تہ چھہ پننۍ نطم "آورن” سوزان ، تلہ کنہِ چھس تاریخ لیکھان 1970۔ شیہ وری پتھ۔
راہی یس کیازِ پننین چیزن تلہ کنہِ تاریخ لیکھنک ضرورت پیوان؟ دویم کتھ سہ کیازِ ہمیشہ شیہ ؤری، داہ ؤری پرون کلام چھپاونہ خاطرہ سوزان؟

یم چھیہ سوچنس لایق کتھہ۔ تۅہہ نش ما کٲنسہِ جواب؟