ازچ فیس بک کتھ باتھ — رسول میرنۍ زہ شعر

32(میہ دۆپ کٲنسہِ ما یِن یم کمینٹ بکار، ییتین تھاوو محفوظ کٔرتھ۔

فارسی شعر

(بشیر بڈگامی صابس کُن):  توہہِ کیازِ اتھ پیٹھ شک زِ رسول میر اوس نہ فارسی پاٹھی شعر ونان۔ بوزِو

کشیدی قوس ابرو، تیر مژگان بهر قتلم
نشستی در کمین اے ترک کماندار امشب

یہ چھہ بہترین شعر۔ نذیر آزادس آے تمۍ پھیر سون ظن رسول میر سندس لفظن ہندس انتخابس کُن یتھ شاذے کانہہ توجہ اوس دوان، راہی صابن چھہ رسول میرنین یمن شعرن "ہچوۍ گُڈنہِ تھیکناوُن” وۆنمت، باقین ہنز کتھ تھاوۍ تو الگے۔ تُرک کماندار گۆو اے کماندار معشوقہ، (خبر لوکھ ما سوچن یہ تُرک (ترکی) کیا اتہِ نس کران)۔ کانہہ ما ونہِ امشب چھہ صرف ردیف چہ مجبوری کنۍ۔ کمین تہ امشب چھہِ (ابرو تہ مژگان کِس کریہنیارس سیتۍ تہِ) اکھ اکۍ سند معنی مکمل کران۔ یہ بوزتو شب خون۔ امشب چھہ اتھ اکھ واقعاتی تجربہ بناوان، بییہ یتھ کتھہِ کُن تہِ اشارہ زِ ازۍ کہ شبہ اوس کیاہ تام سپیشل سپدن وول (شاید وعدک شب) مگر وچھ امی شبہ کۆرتھ میون قتل۔ ژکہِ چھُے ژیہ میون قتل مراد، مگر وچھ کیُتھ کمینہ چھکھ یم ابرو تہ مژگان بنٲوتھ میہ پھساونہ خاطرہ۔ یہ دپی زِ تہِ پتۍ کنۍ چھکھ حملہ کران (کمین اوس اکھ قوم یُس ژورِ پاٹھۍ حملہ اوس کران، ایمبش) یہ شعر چھہ اکھ بوڈ تہ سرون مضمون ہیتھ۔ بڈۍ بڈۍ شاعر چھہِ یاد پیوان۔

رسول میرنین شعرن منز چھہِ واریاہ فارسی لفظ یم تمن ہندین قدیم معنی ین منز ورتاونہ آمتۍ چھہِ، تُرک تہِ چھہ یموے لفظو منزہ اکھ یُس مجازس منز معشوق سندِ خاطرہ ورتاونہ اوس یوان۔ یہ چھہ ہاوان امۍ سند فارسی شعرک مطالعہ چھہ وسیع تہ وقیع اوسمت۔

________

ریختہ

جب آیا تو نے گھبرایا ہمارا من الا جانو
دیا دل تو پرائی نال رلائی تن الا جانو

نذیر آزادن چھیہ یمن شعرن پیٹھ کتھ کرمژ، مگر تمۍ چھیہ اتھ سلسلس منز اکھ غلطی کرمژ۔ تمۍ چھیہ یمن شعرن منز اردو زبانۍ ہنز آمد وچھمژ۔ دراصل اوس یہ اکھ فیشن یمیک ابتدا امیر خسرون کۆر۔ رفیق رازن چھہ کتہِ تام اتھ یمن شاعرن ہنز غیر سنجیدگی وۆنمت، حالانکہ تژھ کتھ چھیہ نہ، امیر خسرو اوس نہ غیر سنجیدہ شاعر، نہ اوس محمود گامی تہ نہ رسول میر۔ رسول میرن یم شعر چھہِ دراصل پنجابۍ (پنجابۍ اردو تہِ ہیکیوس ؤنتھ) یتھ یم واقف ٲسۍ۔ بشیر بڈگامی صاب، یُس شعر توہہِ نقل کۆروہ، تتھ پیٹھ چھیہ نذیر آزادن کتھ کرمژ۔ آزاد چھہ دۅیو لفظو پریشان کۆرمت۔ "نے” تہ "رلایی”۔ نوٹس منز چھُن لیۆکھمت زِ "نے” گژھہِ نہ آسن بلکہ گژھہِ آسن "نہ” یعنی جب تو نہ آیا۔ صحیح معنی یس چھہ ووتمت۔ رلایی لفظس متعلق چھُن وۆنمت زِ رسول میرن چھہ رلاون لفظ اردو گرامرہ حسابہ گۆنڈمت۔ انۍ نس برابری۔ حقیقت چھیہ یہ زِ یم دۅشوے لفظ چھہِ پنجابۍ لفظ۔ اگر ونہِ تہِ کانہہ لاہور گژھہِ سہ بوزِ یم لفظ یتھے پاٹھۍ۔ نہیں چھہ پنجابۍ تلفظ مطابق "نے” بولان، نستہ کنۍ۔ واریاہن اردو شاعرن مثلا جون ایلیا سندس کلامس منز تہِ وچھو تۆہۍ امیک ورتاو "نئیں”۔ پرٲنس اردوس منز تہِ اوس اتھ یۆہے تلفظ۔ ارود اوس نہ کشیر منز ورتاوس لہذا آسہِ مسودہ لیکھن والیو اتھ فارسی مطابق "نے” لیۆکھمت۔ یہ گژھہِ نہ اردوک "نے” بلکہ پنجابی "نے” پرُن۔ یتھے پاٹھی چھہ "رلائی” ਰਲਾਈਂ پنجابۍ لفظ یمیک مطلب مِکس کرُن چھہ یعنی ملایی۔ رسول میر سندۍ یم اکثر شعر چھہِ پنجابۍ تہ کاشر، نہ کہ اردو تہ کاشر۔ اردوک لول گۆو پوزے نذیر آزاد مگر تمہِ سیتۍ ما انو اسۍ اصلس ٹوٹ!!

پس نوشت: یہ "نے” ہیکہِ اردو، پنجابۍ بدلہ کاشر "نے” تہِ ٲستھ۔

"الا جانو” فقرس پیٹھ تہِ چھیہ نذیر آزادن کتھ کرمژ مگر اتہ تہِ چھین غلطی رژھا کرمژ۔ یہ چھہ نہ امۍ سے خطا بلکہ سارنے میہ سان، سٲری چھہِ اتھ یی پران۔ مگر اکہ منٹہ خاطرہ مانی تو کشیر منز چھہ نہ اردو آمت، صرف چھہ کاشر تہ فارسی "جانو” لیکھمتس لفظس کیا پرو؟ jano کِنہJanu (janooo) یہ لفظ تہِ چھہ دراصل پنجابۍ لفظ جانوٗ**یعنی میری جان، ٹاٹھنیار، میانہ زوا، جانانا۔ میانہ خیالہ چھہ نہ یہ کاشر "میانہِ جانو”، یہ چھہ نہ لفظ جانو بلکہ لفظ جانوٗ۔ کاشری پاٹھی ونو نہ جانو بلکہ ونو جانانو، جانو چھہ زیادہ تر پننس پانس کُن ونان۔ بہرحال، اتھ پیٹھ ہیکہِ اختلاف ٲستھ۔ میہ چھہ پورہ یقین یہ چھہ پنجابۍ جانوٗ۔ **ਜਾਣੂ

نذیر آزادن چھہ یہ شعر میہ باسان شاید غلط سمجھمت یتھہ پاٹھی سٲری اتھ غلط پاٹھۍ پران چھہِ، بہ تہ اوسس۔ نذیر آزاد چھہ لیکھان "یعنی اگر ووپرینہ دل دیتتھ، سو رلایی تنہ سیتی تن۔ یہ چھہ اندیشہ تہ تہ ممانعت تہ۔” میہ باسان رسول میر چھہ نہ ونان امس زِ ووپرس دیتتھ دل، اگر تژھ کتھ آسہے تیلہ کیا شکایت ٲس۔ سہ چھہ شاید ونان ژیہ دیتتھ میہ دل یا میہ دیت ژیہ دل، مگر تن درایکھ ووپرس سیتی رلاونہ۔ دیا دل، تو پراے ساتھ رلایی تن الا جانو

پتھ رود "الا” اتھ پیٹھ چھہ نذیر آزادن جان بحث کۆرمت تہ جان نتیجہ برونہہ کُن انۍ متۍ۔ اتھ متعلق چھہ میہ یُتے ونن زِ یہ چھہ فارسی لفظ "الا” یتھ پرٲنس فارسی یس منز "ھلا” تہِ ونان تہ لیکھان ٲسۍ۔ تتی پیٹھہ چھہ کاشر "ہلا” آمت۔ اسۍ چھہِ ونان ہلا، ہلا گژھ، بیترِ۔ الا تہِ چھہ اسۍ ونان۔

یہ چھہ پزۍ پاٹھۍ نداییہ (تنیہہ تہِ) بقول نذیر آزاد۔ فارسی یس منز چھہ یہ خالص الا ورتاونہ آمت، الا ای تہِ، الا یا تہِ، الا تا تہِ، الا گر تہِ۔

الا ای ترک آتش روی ساقی
به آب باده عقل از من فروشوی
سعدی

یمو تمام کتھو علاوہ چھیہ یہ کتھ زِ اتھ شعرس منز چھہ میہ باسان مسودہ لیکھن والین گڑبڑ گۆمت۔ چونکہ اتھ منز چھیہ مختلف زبانہ ورتاونہ آمژہ، اتھ ما آسہِ لوکن یاد تھاونس، لیکھنس منز گڑبڑ گۆمت۔ اڈۍ چھہِ اتھ شعرس منز ساتھ بدلہ نال لیکھان تہ ونان، یُس میانہِ خیالہ زیادہ قرین قیاس چھہ۔ بشیر بڈگامی صاب، توہہ چھہ پرائے بدلہ پرائی لیوکھمت۔  ٹینگ سندس کلیاتس منز چھہ ہمارا بدلہ ہمارے دِتھ۔ یہ غزل چھہ وژنہ چہ چالہِ وننہ آمت۔ تمہِ حسابہ چھہ نہ مطلع صحیح بیہان۔ کیہہ تام گڑ بڑ چھس گۆمت۔

نادر سخن گو

32

رسول مشتاق مشہور آفاق
نادر سخن گو سبحان اللہ

 

نذیر آزاد چھہ پننہ کتابہ منز یمہ شعرہ کہ حوالہ ونان ز شفیع شوق چھہ نہ پننس مضمونس منز رسول میر نہ امہ تعلی ہند (ز سہ چھہ نادر) کانہہ منطقی جواز پیش کرتھ ہیوکمت۔ آزاد چھہ ترین ہندوستانی اردو شاعرن ہندی شعر پیش کرتھ ہاونچ کوشش کران ز تعلی ہنز گژھہ شعرس منز کانہہ دلیل (منطق) موجود آسنی۔ آزاد چھہ سوال پرژھان میرن کمن بنیاذن پیٹھ وون پانس "نادر سخن گو”؟

آزادس چھہ خیال ز‏ فارسی اردو شعری روایتس منز چھیہ یہ اصطلاح ورتاونہ آمژ۔ سیتی چھہ اتھ سیتی "سخندان” اصطلاح تہ جوڑان۔ مگر کتابہ منز چھہ نہ آزاد براہ راست اتھ سوالس کانہہ جواب دوان ز "نادر سخن گو” اصطلاح ورتاونک کیا منطق چھہ۔ کتھ چھیہ روزان تتھے پاٹھی۔

گوڈنچ کتھ چھیہ یہ ز آزاد سند یہ دعوی ز "نادر سخن گو” چھیہ ورتاونہ آمژ اصطلاح چھیہ صرف اکھ گیل۔ فارسی شعری روایتس منز چھیہ یہ اصطلاح صرف اسہ رسول میرس نش میلان۔ کانسہ فارسی شاعرن چھیہ نہ یہ اصطلاح ورتامژ۔ شاید چھیہ یہ کتھ آزادس تہ پتاہ، امی چھہ اتھ سیتی "سخندان” اصطلاح بلی گنڈان۔ سخندان گوو الگ چیز۔ سہ گوو شاعر یا شعر شناس۔ نادر سخن گو اصطلاحک مطلب چھہ سہ کتھہ ونن وول یس کم یاب آسہ۔ قلیل الوقوع آسہ۔ رسول میر سندس شعرس منز کوس منطق چھیہ یس اتھ تعلی پتہ کنہ چھیہ اگر یہ تعلی چھیہ۔ اگر یہ حقیقت چھیہ، سہ کس چیز چھہ یس رسول میرس نادر بناوان چھہ۔ آزاد چھہ تمام کتابہ منز تمے چیز چکاوان یم فارسی شعری روایتس منز عام چھہ۔ یمو چیزو سیتی کتھہ پاٹھی بنہ رسول میر نادر؟

آزاد چھہ شعرک گوڈنیک مصرعہ کھیتھے نوان۔ زن نہ یہ چھیی۔ حالانکہ دویمس مصرعس پیٹھ چھہ میہ شک ز یہ چھا نسخہ پرن والیو صحیح پاٹھی پورمت، گوڈنکس پیٹھ چھہ نہ کانہہ شک۔ رسول میر سند بیاکھ شعر چھہ تتھ ڈکھس:

رسول چھہ عاشق تس پتھ بلاشک
نامی سخن ور الحمد اللہ

یمو منزہ اکہ شعرچ کتھ کران ہیکون نہ بیاکھ شعر نظر انداز کرتھ۔ دوشونی شعرن منز چھیہ زہ کتھہ اہم۔ (1) رسول چھہ عاشق یعنی مشتاق، (2) سہ چھہ مشہور آفاق یعنی نامی۔

سخنور گوو مطلب شاعر۔ یعنی مشہور شاعر۔ مشہور سخندان۔

دوشونی شعرن منز چھہ عاشق آسن رسول میر نہ نامی/ مشہور آسنک وجہ بنان۔ یمن شعرن منز چھہ نہ تمن شعری وصفن کن کانہہ اشارہ یمن متعلق آزاد پنن مقالہ لیکھان چھہ۔

سوال چھہ رسول میر سند خاطرہ کیاز چھہ عاشق آسن زیادہ اہم؟ یہ ما چھہ امی وصفہ کنی (عاشق آسنہ کنی) نادر تہ مشہور؟

بییہ کینہہ شعر یم رسول میرنس عاشق آسنس سخندانی تہ مشہوری ہند وجہ بناوان چھہ

ونی دوان ژھاران وتے چھے ژیی پتے لاران رسول
عاشق مشہور در عالم سخن داں اے صنم

رسول عشقنہ کہوچہ پیٹھ پان
سرہ کر ییتہ معیاری یے لوو

سوز رسولی ونی تازہ تازے
بوز عشقنی کتاب تہ واے

رسولن نارہ کتاب یہ ونی نے چانہ غمے
آسہ کس تاب جواب چاو مے جام جمے

وون یتھس مشکل زمانس منز غزل
رسول میرن مایہ چانے دلبرو

بہارۍ، بہ ہارۍ کنہ بِہارۍ؟

par

نذیر آزاد چھہ لفظن تتھہ پاٹھۍ سنان زِ بازۍ گار سندۍ پاٹھۍ چھہ اکہِ منزہ زہ لفظ کٔڈتھ حیران کران۔ مثلا رسول میر سند یہ شعر:

یس کارِ تھزر آسہِ شمع روے آتش خوے
پروانہ تس یود مارِ در احرام نگارو

نذیر آزادس آیہ اتھ پروانہ لفظس منز (پروا + نہ) زہ لفظ بوزنہ۔ اتھ چھہِ ونان باریک بینی۔ ونان چھہ "دویم معنی چھہ (پروا+نہ) یعنی تس چھہ نہ پرواے تہِ زِ سہ اگر میہ مارِ۔”

امی آیہ چھہ سہ رسول میرنین شعرن منز کٲتہن لفظن ہندۍ گُپتھ معنی تہ شکلہِ دریافت کٔرتھ اسہِ برونہہ کنہِ تھاوان۔

رسول میرن بیاکھ شعر چھہ:

میہ و ۅندہ دودم پراران وندسے پوگل تہ پرستان
بہارۍ ژھانڈتھ پہارہ دینگی کونگی ژہ ہاوتے پان

غلام محمد شاد چھہ "بہارۍ” لفظہ بدلہ "بہ ہارۍ” دوان۔ پہارہ بدلہ پہاڑ تہ دینگی بدلہ ڈینگی۔ بہرحال یمن جایہ ناون ہند چھہ نہ کانہہ بوڈ مسلہ۔ یہند مسلہ چھہ پھورک مسلہ۔ البتہ "بہارۍ” تہ "بہ ہارۍ” چھہِ زہ الگ معنہ والۍ لفظ۔ کُس اکھ چھہ صحیح؟ بقول نذیر آزاد، ناجی منور چھہ ونان "وندہ کہ مناسبتہ گژھہِ دویمس مصرعس منز بہار آسُن نزِ ہارۍ۔ ہارِ سیتۍ گوژھ تیلہِ طوطہ آسن۔”

نذیر آزاد چھہ ناجی منور سندس بیانس منز رسول میرنین شعرن منز مناسبتہ ژھانڈنس تایید لبان۔

ایہام کس دلدادہ نقادس کیازِ نہ اتھ "بہارۍ” لفظس منز اکی ساعتہ "بہارۍ” تہ "بہ ہارۍ” پرنس مزہ یوان۔ یمہ حسابہ سہ لفظن سنان چھہ، "بہارۍ” لفظس منز موجود "بہ ہارۍ” لفظن ہند صوتی ہشر گوژھ نہ نظرانداز گژھن۔ باقی شعرن ییلہ اکہِ کھوتہ زیادہ معنی کڈنس مزہ یوان چھس یتھ شعرس منز کیازِ چھہ بہارۍ لفظسے پیٹھ تھکھ کڈان؟

میہ تام ہے آسہِ ہے، بہ پرہ ہا اتھ بہارۍ لفظس علاقہ بہار تہِ۔ مذاق یکطرف، چونکہ غلام محمد شادن چھہ بہارۍ بدلہ "بہ ہارۍ” دیتمت، لہذا چھن تس غلط ہاونہ خاطرہ پنن اصول ایہام تہِ مشروومت۔

یم کار چھس بہ تہِ کران۔ خۅش گوش زِ بہ چھس نہ کنے زون!

کاسہ گدا چانۍ

jam

رسول میر سند اکھ شعر چھہ:

در دورِ حسنت چشمہ وچھتھ کاسہ گدا چانۍ
خورشید تے جمشید ہیتھ چھی جام نگارو

اتھ شعرس متعلق چھہ بقول نذیر آزاد، غلام رسول ملک پننس رسول میر مونوگرافس منز حافظ شیرازی سندس اکس شعرس سیتۍ مقابلہ کٔرتھ ونان ” فرق صاف ظاہر ہے، رسول میر خورشید اور قدیم پارس کے شہنشاہ جمشید کو یکجا کرتے ہیں ۔۔۔(جو) آپس میں کوئی نقطۂ اشتراک نہیں رکھتے۔”

یہ نقطۂ اشتراک ہاونہ خاطرہ چھہ نذیر آزاد یم مناسبتہ ژھانڈان:
1) معشوقہ سنزہ اچھ تہِ چھیہ بانہ چالہِ یمن منز اوش، شراب یا نور بٔرتھ چھہ
2) خورشید تہِ چھہ بانہ چالہِ یتھ منز زژہ یا نور بٔرتھ چھہ
3) جمشید سند جام تہِ چھہ بانہ چالہِ یتھ منز دنیا بٔرتھ چھہ
4) کاسہ چھہ بمعنی بیچھہ بانہ یُس ژھور چھہ تہ برنہ یُن چھیہ امچ خواہش
5) مگر خورشید تہ جمشید سندس جامس چھیہ محبوبہ سنزن اچھن برونہہ کنہِ بیچھہ بانک درجہ یعنی بانہ چالہِ اسنہ کنۍ خورشید تہ جام جمشیدس منز ہشر تہ یم چھہِ شعرس منز مشبہ کھوتہ کم تر ماننہ آمتۍ۔ یتھہ کنۍ چھیہ یمن ہنز مناسبت

اوت تام گیہ کتھ صحیح۔ نذیر آزادن چھہ شمس الرحمن فاروقی سندیو تحریرو پیٹھہ لفظن ہند اول وانگن کڈتھ تمن ہنزہ مناسبتہ تلاش کرنہِ ہیوچھمت۔مگر نہ چھیہ غلام رسول ملکس پتاہ تہ نہ نذیر آزادس زِ یہ خورشید تہ جمشید کیازِ چھہِ رسول میرن یکجا کرۍ متۍ۔ امیک جواب چھہ تتھ روایتس منز یتھ اسۍ وۅنۍ واقف چھہِ نہ۔ حقیقت چھیہ یہ زِ جمشید و خورشید ناوہ چھیہ مہروہاہ، وامق عزرا تہ ہما ہمایون، شیرین فرہاد تہ لیلی مجنون دلیلن ہندۍ پاٹھۍ اکھ عشقیہ داستان یۅس مثنوی ین منز بیان چھیہ کرنہ آمژ۔ مولانا رومی تہِ چھہ کران۔ جمشید چھہ چین کس بادشاہ سند نیچو تہ خورشید روم کس بادشاہ سنز کور۔ جمشید چھہ خورشیدس خوابس منز وچھان تہ تس عاشق گژھان۔ پتہ تس حاصل کرنہِ نیران تہ جنگ و جدل کران۔ بہرجال، یۅہے چھہ اتھ شعرس منز یم زہ ناو یکجا کرنک اصل وجہ۔ داستان پرتھ نیرِ رسول میر سندس شعرس شاید بییہ ہن پھٹھ۔

پس نذیر آزادنہِ لفظہ تفتیش برونہہ چھیہ جمشید و خورشید اتھ شعرس منز اکھ تلمیح۔

محمد یوسف ٹینگ چھہ پننس مرتب کلیاتس منز لفظن ہندین معنی ین سیتۍ جمشید تہ خورشید وول مصرعہ دوان تہ معنی رنگۍ چھس لیکھان "ایرانک بادشاہ یس جام جم اوس یمہ منزہ ساری دنیاہک حال بوزنہ اوس یوان۔” گویا ٹینگس تہِ چھیہ نہ خبر ز جمشید تہ خورشید چھیہ عشقہ داستان یہند ذکر اتھ شعرس منز چھہ آمت۔

jamshed

ناجی منور چھہ کلیات محمود گامی یس منز صفحہ 204 پیٹھ زبانۍ روایتک اکھ بٲتھ دوان یُس یتھہ پاٹھۍ شروع چھہ گژھان:

قیصر رومنۍ ہاے دخترۍ یے
ٲخر درایکھ پرۍ یے ذاتھ

بۅنہ کنہِ چھہ قیصر رومس پیٹھ نوٹ لگٲوتھ لیکھان "یہ بٲتھ چھہ باسان کمہِ تام مثنوی ہند حصہ یۅسہ زن رٲومژ چھیہ۔” ضرور چھہ یہ امی جمشید و خورشید مثنوی ہند حصہ اوسمت یۅس محمود گامی ین ترجمہ آسہِ ہے کرمژ یا ممکن چھہ پورہ آسہِ ہن نہ کرمژ۔ قیصر رومنۍ کور ٲس خورشید۔ کشیرِ منز چھہ نہ از وۅنۍ امہ مثنوی کیا امہ عشقیہ داستانک تہِ کانہہ علم۔ رسول میرس چھہ امیک علم اوسمت تہ شاید آسہِ ہن محمود گامی سنز مثنوی تہِ وچھمژ۔

دورِ حسنت چہ جایہ چھہ غلام محمد شاد گِردِ چشمت دوان۔ اصل کیا چھہ بہ ہیکہ نہ کینہہ ؤنتھ مگر یہ چھہ نہ تران فکرِ یم حضرات کتھہ پاٹھۍ چھہ اکۍ سے لفظس کتہِ کور واتناوان؟ ییژ فرق وچھتھ چھہ میہ شک گژھان امہ شعرکۍ ساری لفظ چھا تہِ رسول میرنۍ ۔ بہرحال،  نذیر آزاد چھہ دور لفظس متعلق ونان ” شعرس منز چھہ دورِ حسنت وننہ آمت تہ دورک اکھ معنی چھہ حکومت۔” یہ چھیہ حقیقت، مگر نذیر آزاد چھہ شعرکس پننس بحثس منز مشراوان زِ دورک مطلب چھہ گردش تہِ یُس جام کہ مناسبتہ زیادہ اہم چھہ۔

اچھا جمشید اوس اکھ ایرانی حکمران تہِ۔ اوستا زبانۍ منز چھہ جمشیدک مطلب "تابان” تہِ یۅس آفتاب (خورشیدچ) تہِ اکھ خاصیت چھیہ۔ فردوسی چھہ ونان زِ جمشید اوس کلس پیٹھ سۅنہ سند تاج تھاوان تہ ییلہ سہ لعل و جواہرات وٲلس تختس پیٹھ بیہان اوس سہ اوس زن آسمانس منز آفتاب آسان۔

برآمد بر آن تخت فرخ پدر
به رسم کیان بر سرش تاج زر

گویا کیا خورشید تہ کیا جمشید یم چھہ اکی چیزکۍ زہ پاس۔

ٲخرس پیٹھ کرن بہ مرزا غالب سند اکھ شعر پیش یُس رسول میر سندس شعرس سیتۍ پرن گژھہِ۔ خبر غلام رسول ملکس کونہ یہ شعر یاد پیومت؟ نذیر آزادس تہِ چھہ نہ یہ شعر ذہن نشین نتہ کرہے سہ اتھ ضرور نقل:

زکاتِ حسن دے اے جلوۂ بینش کہ مہر آسا
چراغ خانۂ درویش ہو کاسہ گدائی کا

ابرو دو نون، چشمان دو صاد

32

نذیر آزادن چھیہ رسول میرس پیٹھ  بہترین کتاب لیچھمژ۔ کتابہِ منز چھہ تواریخ تہ ادبی رشتہ کنۍ یہ ہاونہ آمت زِ رسول میر اوس کاشرس منز تمی شعریاتک ترجمان یۅس تمہ وقتہ فارسی تہ اردوس منز رایج ٲس۔ یہ چھیہ اہم کتھ۔ دویم اہم کتھ یۅس اتھ کتابہِ منز چھیہ، سۅ چھیہ رسول میر نین واریاہن شعرن ہنز تفہیم فارسی اردو شعریات کہ تصورہ مطابق۔ شعرن متعلق چھہ واریاہ تم نکتہ واضح کرنہ آمتۍ یمن کن نہ عام طور ظۅن گژھان اوس۔

وژنک اکھ بند یتھ متعلق نذیر آزادن غلام محمد شاد روٹمت چھہ، چھہ یتھہ پاٹھۍ:

وچھتون لیوکھ کمۍ اوستاد
ابرو دونوں چشماں دو صاد
لوح جبیں بینی قلم
کن تھاو رۅخ ہاو اے صنم

غلام محمد شاد چھہ امیک گۅڈنیک تہ دویم مصرعہ یتھہ پاٹھۍ دوان

وچھتون سہ کمۍ کور اوستاد
ابرو دو گوں چشماں دو صاد

دوگوں لفظس چھہ شاد معنی دوان : زہ کمٲنۍ

آزاد چھہ لیکھان:”اسۍ کرو فرض ِ کٲنسہِ لسم جو قسمکۍ لغت نگارن آسہِ امیک معنی کمان درج کورمت تو پتہ تہِ چھیہ نہ رسول میرنس شعرس سیتۍ اتھ کانہہ مناسبت۔ دراصل مناسبتس سیتۍ لۅے ُخۅے نہ آسنہ کنۍ چھہ شاد صٲبن ابرو کمان ترکیب نظرِ تل تھٲوتھ گۅڈہ معنی ژھونڈمت تہ پتہ لفظ تھرمت۔”

حقیقت چھیہ یہ زِ غلام محمد شاد چھہ نہ لفظ تھران بلکہ اتھ دوگون لفظس چھہ معنی تھران، خبر تم کتہِ چھہ اونمت یہ دوگون لفظ، شاید کنہِ قلمی نسخہ پیٹھہ۔ نذیر آزاد چھہ یہ مصرعہ یتھہ پاٹھۍ دوان یُس صحیح چھہ

ابرو دو نون چشمان دو صاد

نذیر آزادس ٲس نہ مثال میسر۔  ابرووس چھیہ فارسی روایتس منز نونس سیتۍ تشبیہہ دنہ آمژ۔ یہ چھہ نہ رسول میر سند پنن اختراع۔ شاید آسہِ ہے رسول میرس مولانا سنزِ مثنوی ہند یہ شعر مدنظر:

نون ابرو صاد چشم و جیم گوش
بر نوشتی فتنہء صد عقل و ہوش

اردوس منز تہِ چھہِ یم یتھے پاٹھۍ ورتاونہ آمتۍ۔ مثلا سراج اورنگ آبادی سند یہ شعر

ہیں صاد اس کی آنکھیں اور قد الف کے مانند
ابرو ہے نون نادر گیسو ہے لام گویا

مولانا چھہ یہ شعر اکس مناجاتس منز پیش کران، یمہ تعلقہ رسول میر سندِ بندکہ گۅڈنکہِ مصرعک تہِ جواز پیدہ گژھان چھہ۔ رسول میر چھہ اتھ وژنس منز معشوق سندۍ تعریف کران تہ اتھ بندس منز معشوق سند ۍ کنۍ خدایس تعریف تہ خدایہ سندۍ کنۍ معشوقس تعریف۔ امہ چی ریفرنس چھہ اوستاد لفظ، مگر ٹینگ سندس متنس منز چھہ گۅڈنیک مصرعہ عجیب گرامر پیش کران، شاد سند دیتمت مصرعہ چھہ  شاید زیادہ موزون۔

ٹینگ چھہ یہ مصرعہ پننس کلیاتس منز دۅن جاین دوان۔ پننس تبصرس منز تہ متنس منز۔ مگر دۅشونی جاین چھہ "دو نون” بدلہ "دونوں” دوان یُس زن غلط۔ چھہ۔ دراصل چھہ ٹینگ مچھہِ پیٹھ مچھ ماران۔ تمۍ یتھ نسخس پیٹھ یہ وچھہ تتہِ تہِ چھہ یہ "دونوں” د‏تھ، "دو” پتہ لفظہ ژھینچ جاے تراونہ ورٲے "نوں” یمیک مطلب "دۅشوے” چھہ۔ نذیر آزاد چھہ بلۍ ونان زِ ٹینگ سندس متنس منز چھہ مناسبتک خیال نظرِ گژھان۔ اگر ٹینگن یہ صحیح لیوکھمت آسہِ ہے (نونس چھہِ نہ فارسی یا اردو یا کاشرس منز "نوں” ونان، بییہ چھیہ دو تہ نون لفظن درمیان لفظہ جاے ضروری)، شاد کیازِ لگہِ ہے "دونوں” لفظک بیہ محل تہ بیہ مطلب ورتاو وچھتھ اتہِ نس کانہہ مطلب وول لفظ ژھانڈنہِ۔ افسوس چھہ زِ تس آو نہ صحیح تہ برونہہ کنیک لفظ ٲستھ تہِ "نون” اتھہِ۔

امہ اکہِ بندہ علاوہ چھیہ نہ ٹینگ تہ شاد سندس متنس منز کانہہ فرق۔ البتہ چھہ اکھ مصرعہ ٹینگ غلط دوان

موسیقار زن ونہِ زار

شاد سند مصرعہ  چھہ صحیح باسان۔

سازندر زن وایہِ تار

رسول میرن چھہِ کینژن شعرن منز معشوق سندِ ظاہری حسنہ کین تعریفن منز فارسی شعری روایت چہ دیکھا دیکھی منز حروف تہجی ورتاوۍ متی یتھہ پاٹھۍ اسۍ پیٹھمس بندس منز وچھان چھہِ۔ نذیر آزاد چھہ ٹینگس تھر کھٲلتھ ونان "میرن (کور) پزۍ پاٹھۍ بقول محمد یوسف ٹینگ یہ (عربی/فارسی/اردو) رسم خط مستحکم تہ قلعہ بند۔”

ٹینگس چھیہ یتھنے چیزن ہنز تلاش آسان۔ سہ چھہ امہ قسمہ کیو بیانو سیتۍ پننہِ تنقیدچ آرایش کران۔ ونان چھہ "شعر کہ تخلیقی استعمالہ سیتۍ (بنوو رسول میرن) عربی، فارسی رسم الخط تہ خاص کر تمیک نستعلیق طرز کاشرِ زبانۍ ہنز تہذیبی وراثت۔” ٹینگس چھہ یتھنے غیر ادبی معیارن مدنظر شاعرن تھر کھالنس مزہ یوان۔

سوال چھہ یہ زِ کیا رسول میرس برونہہ اوس نا حروف تہجی کٲنسہِ شعرن منز ورتوومت؟

محمود گامی تس برونہہ ونان:

الف قد میون سپد دال

رسول میرس برونہہ ینہ وول سۅچھ کرال چھہ حروف تہجی ین پیٹھ اکھ پورہ وژن ونان، یمیک اکھ بند مثالہ پاٹھۍ پیش چھہ:

خ خودی نشہِ یُس نہ پیوے
د دنیا گوس نالۍ
ذ ذلتس منز سہ پیووے
بوز عربی روویے

رسول میر اوس اکہِ شعری روایتچ تقلید کران یتھ منز حروف تہجی سیتۍ معشوق سندس حسنس تعریف کرنہ ٲسۍ یوان، نستعلیق کتہِ آو اتھ منز؟ میم دہان ما چھہ نستعلیق میم، بلکہ چھہ یہ نسخ میم یعنی عربی زبانۍ ہند میم ییتہ پیٹھہ یہ حروف تہجی ورتاونچ روایت فارسی یس منز آمژ چھہ۔ رسول میر سنزِ شاعری منز یۅس شوخی یا خوش مزاجی (playfulness) چھیہ تمہ کنۍ آو یہ استعمال تس زیادہ بکار۔ رسول میرس برونہہ چھہ حروف تہجی یک ذکر شیخ العالم کران:

کل علم چھے الف لام میم شین

تیلہِ کونہ دمو اسۍ کاشرِ زبانۍ منز عربی فارسی خط مستحکم کرنک اعزاز شیخ العالمس؟

حروف تہجی فارسی شعرچہ روایژ ہندس تقلیدس منز ورتاونس تہ کاشرِ زبانۍ منز یہ نستعلیق خط مستحکم کرنس کس تعلق چھہ؟ سہ کمۍ تہ کر کور کاشرِ کہ خاطرہ کانہہ تہِ رسم خط مستحکم؟ یہ رسم خط اوس کشیرِ منز فارسی یس ستیۍ آمت تہ فارسی لیکھنہ خاطرے اوس ورتاونہ یوان، کاشرۍ قلمی نسخہ تہِ اگر اتھ منز لیکھنہ آے تم آیہ نہ رسول میر سندیو یمو شعرو کنۍ لیکھنہ۔ فارسی کنۍ اوس یہ خط رسول میرس برونہہ کشیر ہندس تہذیبی وراثتس منز شامل سپدمت۔