رفیق رازن نوو قصیدہ

کینہہ ریتھ برونہہ پیوو میہ امین کامل سندس قصیدس اکھ تفصیلی نوٹ لیکھن تکیازِ تتھ متعلق لیکھنہ آمتس اکس مضمونس منز اوس تمیک معنہِ مطلبے غلط سمجھنہ آمت۔ کاشرس منز چھہِ نہ قصیدہ لیکھنہ آمتۍ تہ نہ چھہ سون دور قصیدن ہند دور۔ بقول شفیع شوق تسندس ادبک تواریخس منز چھہ ترجمن ہند ذکر یمن منز بوصیری سند البردہ خاص طور اہم چھہ۔ یمو علاوہ چھہِ رسا جاودانی، امین کامل، رفیق رازن (خبر بییہ تہِ ما آسہِ کٲنسہِ ) اکھ اکھ قصیدہ لیوکھمت۔  

کامل سند قصیدہ چھہ کم و بیش عربی قصیدہ چہ تنظیمہِ ہنز پابندی کران۔ نوۍ مہ صدی منز چھہ ابن قطیبہ "کتاب الشعر والشعرا” ہس منز ونان زِ قصیدہ چھہ ترین حصن پیٹھ مشتمل آسان۔ نصیب، تخلص،تہ ٲخری حصہ یتھ منز فخر یا ہجو یا حکمت آسان چھیہ۔ اسۍ چھہ یم تریشوے عناصر کاملنس قصیدس منز وچھان۔

مۅغلن چھیہ پننۍ ژھاے بہت دۅن چشمن (نصیب)
فن ہاوہ تہ کیا ہاوہ یتھس وقتس ون (تخلص)
شاداب یہ ریشۍ وٲر تہ یم میانۍ سخن (فخر)

کاملنس قصیدس مقابلہ چھہ رفیق رازن بہترین قصیدہ تمۍ سنزِ گۅڈنچہ شعرہ سۅمبرنہ منز درج۔ یہ قصیدہ چھہ امۍ بحضور شیخ العالم لیوکھمت۔ اتھ قصیدس پتہ کنہِ چھہ کامل سنز افکار نظمہ ہند آہنگ الغابہ کنن گژھان، مگر یہ قصیدہ چھہ راز سندِ طرز اداہک اکھ ممتاز تہ بہترین نمونہ۔ میانہ خیالہ چھیہ کامل سند "قصیدہ” تہ راز سند” بحضور شیخ العالم” کاشرِ شاعری ہنزہ زہ اہم نظمہ یم یمن دۅن شاعرن ہندِ تخلیقی قوتکۍ نمونہ چھہِ تہ یمن دۅشونی شاعرن ہنزِ شاعری تہِ واریاہس حدس تام کلہم پاٹھۍ الگ کڈنس منز  مدد کٔرتھ ہیکن۔

بلۍ اچھرہ گیندن میون چھہ اچھرن پھرۍ پھہہ
ژھور میلہِ قلم میون چھہ معنی ورقن
گرمیوس تہ ژلۍ مصلحتن نیرتھ چل
نرمیوس تہ لگۍ ڈیر وتن پیٹھ سخنن
ژھۅکہِ میانۍ فکر روسۍ کچن ڈلہِ رفتار
تھکہِ میانۍ نظر، زون اچھن لگہِ زونن
چھس کنگہ دزاں پانہ تہ پاواں شہلتھ
چھس واوہ ہراں پانہ براں گل ہلمن
یا یکھ تہ وچھکھ میانہِ کلامک ون چھپھ
یا یکھ تہ ژھنڈکھ میانہِ خیالکۍ دٔدون

(قصیدہ، امین کامل)

یا چھی میہ تمے خواب اچھن لارۍ ونیک تام
یاچھس بہ ممت یُتھ یہ جنت گوو میہ عطا ہیو
کژتام اچھر چھم زِ یمن چونہِ جراں چھس
نورٲنۍ علمدارہ میہ باوُن چھہ مدعا ہیو
یا میانۍ کشیرے چھیہ میہ کژ سنگ بنیمژ
یا چھس بہ ظہرۍ روٹہ گومت نیول ہوا ہیو
تھووکھے نہ میہ کن گوش یوتاں ہکۍ تہِ ژھوکییم
وچھہس نہ یوتاں گردِ شروپس وتھرہ صدا ہیو

(بحضور شیخ العالم، رفیق راز)

 ییتہ کامل سندین شعرن منز جلال تہ خۅد اعتمادی چھیہ، تتہ چھیہ راز سندین شعرن منز عاجزی تہ طلب۔ میہ باسان کامل سنزِ شاعری منز چھیہ گرمی تہ راز سنزِ شاعری منز نرمی۔ کامل سنزِ شاعری منز چھہ بہ اہم تہ ژہ چھہ امہ کُے  پرتو، راز سنز شاعری چھیہ برعکس، بہ چھہ ژہ ہک پرتو۔ کامل سند قصیدہ چھہ اکھ خشمہ ہژ شکایت، راز سند بحضور شیخ العالم چھہ اکھ مظلوم آلو۔ کامل سنزِ شکایژ منز چھہ خیر تہ شرک حوالہ، راز سندس آلو منز چھیہ داد تہ بدادچ روداد ۔ دۅشوے شاعر چھہِ اکثر تضاد پیش کران۔ کامل سند تضاد چھہ تکمیلی، راز سند تضاد چھہ تخالفی۔

راز سند  بیاکھ قصیدہ "درمدح وجود” سپد میہ حال حالے مصنف سندِ طرفہ دستیاب۔ قصیدہ چھہ پیش:

قصیدہ در مدح وجود

 رفیق راز

جیرہ ہیو آو سوکوتس وۅں پھرس میٲنس تل
ناگہاں از تہِ ہیوتن روتلہِ وہراون گل
بر زباں چھے میہ شب و روز دعاٖے سیفی
تابعیا بوز ستتھ ساس پیٹھی چھم موکل
تھود تہ بوڈ یوت چھہ بس فیضِ دعاٖے سیفی
تی سپد یی میہ وونم گوو نہ زنہے ادلہ بدل
چھس بہ لب بستہ سخن چھس نہ کراں مصلحتا
یی وناں چھس تہ گژھاں تی چھہ، زباں چھیم کرتل
سلطنت میانہ سکوتچ چھیہ حدو روس تہ انیکھ
اتھۍ اندر گیر گمتۍ اکھ یہ ابد بییہ ہہ ازل
میون قالینہ یہ میژ، تحت سلیماں تہِ کتھا
چھس بہ سلطان سکوتک تہ کھڑا چھِم موکل
میون پِٹھ چھس تہ یہ میژ باج ہیواں اسمانس
میانہ بیمے چھہِ تہہ آب کھٹتھ دشت و جبل
منتظر جن تہ ملک کیتۍ اشارس میٲنس
میون حکمے چھہ شب و روز اناںیم بعمل
میون دستخط نہ یوتاں مِسلہِ پیٹھن سپدِ لگے
در جہاں یی نہ کہنی کٲم توتاں رو بہ عمل
آسہِ بے وونت سمندر تہ کُنُے دام کڈس
آسہِ صحرا تہ کرن غیب یمن پادن تل
اوبرہ لونگ آسہِ گُرکۍ پاٹھۍ کرس زین اتی
وزملا آسہِ اتھن کیتھ بہ تُلن کمچہ بدل
پٲز اسمانۍ وپھاں آسہِ کرس گردنہِ رز
بے وفا دراو اگر جن تہ کرس ہٹۍ ہانکل
نون اگر باوہ تہ برپا چھیہ قیامت سپداں
نون اگر نیرہ تہ ٲنن چھیہ گژھاں عقلہ بقل
سونتھ یی لارِ ہوتُے ناد اگر ہے لایس
یتھ کُلس تل بہ قدم تھاوہ پھلے نیریس جل
گوس ناراض تہ موسم تہِ گژھن بے تاثیر
گوو نہ منشا میہ اگر نیرِ نہ کلۍ شاخن پھل
گلشنس منز چھیہ کراں میون ذکر شاخ بہ شاخ
گیت میانی چھیہ گیواں ماچھ گنس منز یہ نحل
لوگ یمن میانہ اشیک سگ تہ لوبک یوت جہار
تاپہ کراین نہ کہنے جاٖے تمن بونین تل
چھاوہ یود ڈاے اچھر کورہ صفحس، تیمبرِ وۅتھن
شل تہ پل آب گژھن ہاوہ اگر باوژ بل
تاحشر روزِ صحیح ، لیکھہ اگر حرفِ غلط
میون اسلوب جدا میون چھہ انداز نیرل
کاکد اسمان بنی میانۍ اچھر ہے جرہہس
سنکھ اچھرن تہ یہ بتراتھ ژیہ باسی دلدل
تراوہ یود زلف پریشاں بہ اویزاں لفظن
دۅہلہِ کھین دوکھہ تہ پرواز کرن راتہ مۅغل
کم سخن ور چھِہ یواں رٹنہِ میہ نش اچھرہ زکات
ڈیڈِ تل میانہِ گداگر چھِہ صمد میر تہ لل
چھکھ پریشان سیٹھا بوز یہ سر تازہ غزل
در جہاں مسلہ چھہ کُس؟ نیرِ نہ یتھ کانہہ رت حل
کھۅر پکاں رودۍ، یوتامت نہ لگے گوکھ وتُن
مۅل کھساں رود، یوتامت نہ سۅنس گیہ سرتل
کانہہ اگر ٹھک چھہ کراں زورہ پہن دروازس
شورِ محشر چھیہ تلاں پرانہِ زمانچ ہانکل
پانہ سے سیتۍ سخن کر یہ عبادت چھیہ عظیم
پانہ سے سیتۍ شبس روز کراں جنگ و جدل
یم چھیہ کنکریٹ وۅں گوو نیج یوتامت نہ پھٹیکھ
بلبلا یی نہ کہنے پچنہِ یمن دارین تل
ژانگۍ لرزییہ لکو دوپ زِ سحر ووت قریب
کینہہ دپاں واوہ لہر ٲس نژاں شاخن تل
نے کڈِن شاخ نہ برجستہ پھلتھ آو یُہس
یا چھہ ہوکھمت یہ کُلے یا چھہ میہ ہیو اندرہ ہمل
یاد کورمکھ میہ سیٹھا داغ دلکۍ ژلۍ نہ مگر
رود پیوو شرانہِ مگر ووتھ نہ یمن وتھرن مل
یم چھ کینہہ راز میہ کرۍ فاش یمن شعر مہ ون
یم چھ کینہہ لعل کھٹتھ ٲسۍ ہتن پردن تل
ٲخرس منزلِ مقصود طوافک چھہ فنا
روزۍ تن کوت نژاں روزِ یہ بدمست بتل
ٲخرس دی یہ زمیں تیژ دنن ، لرزِ بدن
تھدۍ تہ بڈۍ بام پتھر لاینہ ین براندن تل
چھس نہ پانس تہ گژھاں نظرِ ژیہ کیا ونۍ بہ دمے
چھس بہ فی الحال کھٹتھ پانہ ستن سیندرن تل
عالمس پھیرِ نووُے زو تہ وۅتھیس وترہ بنیل
جاہلس میون عشق میون جنوں باسہِ جہل
تروو گانٹن تہ گریدن لوو بدن ٹکرہ کٔرتھ
چھوو ژھوپ دوپ تہ یہ وٲناکھ رحک گون جنگل
تیتھ شہنشہ بہ یمس زیر نگیں ملک خدا
تیتھ فقیرا بہ میسر نہ یمس ہاکھ وۅپل
وٹھ دزاں چھم تہ سرابس چھہِ وۅتھاں آبہ ملر
سیکھ دزاں آسہِ تہ باساں میہ پدین تل مخمل
تارکھ افتاب تہ مہتاب چھہِ اعراب فقط
میون مصحف چھہ یہ اسمان زمیں میانۍ رحل
میانہِ کوچے چھہ لباں لوکھ خزانن ہند پے
میانۍ دریوزہ گرے درایہ پتو اہل دول
کھۅر چھِہ کھۅربانہ ورٲیی تہِ وتن کنڈۍ چھِہ ؤوِتھ
آو فرمان متس دراو بہ اندازِ رمل
از قصیدا یہ لیکھن اوس میہ در مدحِ وجود
نظمہِ نزدیک اوے پیوو میہ انُن صنفِ غزل

 

یہ گژھہِ یاد تھاوُن کنہِ ساعتہ ہیکہِ اکھ زیوٹھ غزل تہِ قصیدچ شکل رٔٹتھ تہ اکھ قصیدہ تہِ ہیکہِ زیوٹھ غزل بٔنتھ۔ رفیق راز  چھہ تمن کینژنے شاعرن منز یمن زبردست شعرگو ؤنتھ ہیکو، شعر گو مطلب یم اکۍ سے (ردیف) قافیس منز  درجن واد شعر ؤنتھ ہیکن۔ کاشرۍ شاعر چھہِ اکثر اکھ زہ قدم کڈتھے فارمہ رنگۍ تہِ تہ فکری طور تہِ ژھۅکان۔ یہ قصیدہ چھہ بحضور شیخ العالم قصیدکۍ پاٹھۍ تخلیقی وفورچ اکھ زبردست مثال۔

قصیدس منز چھہ راز تیتھ متن تخلیق کران یُس نہ شاعری علاوہ بییہ کانہہ چیز ہیکہِ ٲستھ۔ آہنگ، لفظہ ورتاو،  پیکر تراشی، علامتی مفہوم  ہیکن کنہِ تہِ متنس شعرک درجہ دتھ۔ اتھ منز چھیہ زبانۍ ہنز متاثر کن روانی، استعاراتی اہمیت سیتۍ مملو پیکرن ہنز تخلیقی قوت ظاہر۔ راز سنزِ شاعری ہند سہ پہلو یتھ سریت  تہ حیرت وننہ یوان چھہ یا میانین لقظن منز معجزاتی تجربہ چھہِ یتھ قصیدس منز غالب۔ راز سنزِ شاعری ہندِ حوالہ اتھ قصیدس منز غیر متوقع جلال چھہ دراصل معجزاتی تجربن ہنرِ  پیکر تراشی ہند نتیجہ، یہ چیز چھہ اتھ کامل سنزِ شاعری تہ خاص کر قصیدہ کہ جلالی صورت حال نش الگ کڈان۔ راز سند نفس مضمون چھہ اکثر صورتن منز امی پیکر تراشی ہندِ پونسک دویم پاس۔ یم معجزاتی تجربہ چھہ قصن، داستانن، معجزن، جود ویی منظرن ہند ماحول یا یمن ہندۍ اشارہ قایم کرنہ سیتۍ وجودس منز یوان۔

راز سند یہ قصیدہ چھہ انسانی وجود کس تعریفس منز تہ انسان سندِ متحیر کرن وٲلہِ قوتک تہ امکانن ہند شعری اظہار۔ یہ قوت چھیہ دعاے سیفی کنۍ  یتھ متعلق واریاہ شارح بیان کران چھہ  زِ یہ پرنہ سیتۍ چھہ عجایباتن ہند ظہور سپدان تہ اتھ چھہ حیرت انگیز اثر۔ مصنف چھہ قصیدہ کس اتھ  طلسماتی ماحولس فایدہ تُلتھ  غزل تلنہ برونہہ پننین شعری قوتن تہ امکاناتن ہندس موضوعس کن تہِ پھیران۔ اتھ قصیدس چھہ کامل سندس قصیدس سیتۍ اکھ دلچسپ ہشر یہ زِ دۅشونی منز چھہِ روحانی حوالہ میلان۔ ییتہ راز سندس قصیدس منز دعاے سیفی کین روحانی قوتن ہنز کتھ چھیہ، کامل سندس قصیدس منز چھہ گۅڈنکۍ سے شعرس منز یہ روحانی حوالہ سورة البقرة  کس آیتس کن اشارہ ۔ مۅغلن چھیہ پننۍ ژھانپھ بہت دۅن چشمن۔  تمہ پتہ چھہ یہ روحانی اشارہ  قصیدس منز وسجار لبان۔ امہ سورہ شریفچ تھیم "منکر حق” چھیہ پورہ قصیدک موضوع بنان ۔ دۅشوے مصنف چھہِ روحانی صورت حالس پننس فنس سیتۍ واٹھ دوان۔ 

غزل کنہ وژن؟

mahjoor

نیب 21 منز تُل رفیق رازن مہجور سندِ اکہِ غزلہ کس وزنس متعلق سوال۔ غزل چھہ کلیاتس منز یتھہ پاٹھۍ درج:

للونۍ میہ چھم چانۍ لولہ چھۅکھ مۅکھ ہاوتو مارہ متیو
ینہ چانہِ ژلنم غم تہ دۅکھ رۅخ ہاوتو مارہ متیو
دل میون گۅڈہ برمرووتھن پتہ کیازِ داوس لوگتھن
دعدہ آدنکۍ لولکۍ سخن یاد پاوتو مارہ متیو
درایہ سازہ منزہ آوازِ ناز بوزتھ پتھر پییہ عشقہ باز
بے جان امہِ سازک یہ راز ننۍ راوتو مارہ متیو
چون رنگ و روپ چون خط و خال ڈیشتھ ژلاں غم تے ملال
ظلمکۍ تہ ستمن ہندۍ خیال مشراوتو مارہ متیو
ییلہ مس چھہِ چاوان عاشقس پر تہ پان ہوے باسان تس
ژہ تہِ پننہ اتھہ ستۍ لولہ مس میہ تہِ چاوتو مارہ متیو
دل میون لولہ نارس اندر یژ صاف گوو زٲلتھ کھۅچر
وۅنۍ لولہ بازارس اندر مۅلناوتو مارہ متیو
چھکھ زندگی بخشاں کمن یہ تہِ تازہ کرتن میون من
بے حیس گومت شونگمت چمن وزناوتو مارہ متیو
ییلہ عقلہِ کور لولس جواب ووتھ شور عالم گوو خراب
وزناوۍ متہِ فتنک یہ خواب بییہ ساوتو مارہ متیو
پوشہ نولہ سندین آلون گل پانہ گلۍ چھِکھ آلون
مہجور سنزہ کتھہ کیا لوَن پرکھاوتو مارہ متیو

راز چھہ ونان زِ مہجورن یتھ وزنس پیٹھ یہ غزل وونمت چھہ، یہ چھہ نہ تتھ پیٹھ پورہ وتران۔ ٲخرس پیٹھ چھہ راز امہِ غزلہ کس قافیس پیٹھ تہِ اعتراض کران ۔ ونان چھہ: "مطلع تل چھہ صاف ننان زِ غزلک قافیہ چھہ (رۅخ) (مۅکھ) بیترِ تہ ردیف (ہاوتو مارہ متیو) مقرر کرنہ آمت۔مگر امچ پابندی چھیہ نہ مطلع ورٲے کنہِ تہِ شعرس منز نباونہ آمژ۔”

بہ کرہ راز نین دۅشونی نکتن پیٹھ کتھ۔گۅڈہ تلون قافیچ کتھ۔

سانۍ وژن لیکھن والۍ شاعر ٲسۍ پننس کلامس غزلے ونان۔ امیک ثبوت چھہِ تم قلمی نسخہ یمن منز وژنن پیٹھ تہِ غزل عنوان چھہ دتھ۔ امہ علاوہ ٲسۍ سٲنۍ شاعر پانس غزل خوانے ونان۔ مثلا وچھوکھ یم شعر:

حاجنک اسد غزل خانے    صاحب دل نے ونانے
تمۍ پان زولے اتھ عشقہ نارس   سلورِ منز لارس تہ لولو
(اسد پرے)

رازہ ہونزے فیض ازالی چھہ تو  وازہ محمود کیا یہ غزل خانہ سون
(وازہ محمود)

باہوشن چھس باواں سیر   بے ہوشن دواں الماس تیر
وون احد زرگرن غزل رنگمار   کافر سپدتھ کورم اقرار
(احد زرگر)

احد زرگر زاگہِ شلس   لاگہِ غزل خان
باغ رضوانہ حورہ ولس   سے میہ دلس کان
(احد زرگر)

چیتہ محمود مستانے   برۍ برۍ پیالہ موے
ازلی چھکھ غزل خوانے مہ کر دیوانگی یے
(محمود گامی)

یم ساری مصرعہ چھہِ وژنن ہندۍ ۔

لل دیدِ ہند "واکھ تہ وژن” مصرعہ الگ ترٲوتھ چھہ یہ تحقیق کرنک ضرورت زِ وژنس وژن کرہ پیٹھہ تہ کتھہ پاٹھۍ گوو شروع۔ کلیات مہجورس منز چھہ صفحہ 207 پیٹھ اکس وژنس متعلق نوٹ زِ مہجورن چھہ تتھ پننہِ اتھہ تلہ کنہِ یتھہ پاٹھۍ تاریخ درج کورمت۔ ” 2 ہار 98 بکرمی کو غزل شروع ہوکر7 ہار 98 بکرمی کو ختم ہوئی۔” گویا مہجور تہِ چھہ پننین وژنن غزلے ونان اوسمت۔ ابن مہجور تہِ چھہ اتھۍ صفحس پیٹھ بییس نوٹس منز وژنس غزلے ونان۔ مہجور سند پیٹھم غزل تہِ چھہ فارمہِ کنۍ ژکہِ وژن۔ کلیات مہجورس منز چھیہ اتھ غزلہ کس صورتس منز کتابت کرناونہ آمژ، یمہِ کنۍ اتھ پیٹھ پرن والین غزلک دھوکہ لگان چھہ تہ رفیق رازن تہِ چھہ نہ امہِ کس فارمس کن زیادہ ظۅن دیتمت۔ بہ کرن یہ وژنہ چہ شکلہِ منز بۅنہ کنہِ پیش۔

للونۍ میہ چھم چانۍ لولہ چھۅکھ   مۅکھ ہاوتو مارہ متیو
ینہ چانہِ ژلنم غم تہ دۅکھ   رۅخ ہاوتو مارہ متیو

دل میون گۅڈہ برمرووتھن   پتہ کیازِ داوس لوگتھن
دعدہ آدنکۍ لولکۍ سخن   یاد پاوتو مارہ متیو

درایہ سازہ منزہ آوازِ ناز   بوزتھ پتھر پییہ عشقہ باز
بے جان امہِ سازک یہ راز   ننۍ راوتو مارہ متیو

چون رنگ و روپ چون خط و خال   ڈیشتھ ژلاں غم تے ملال
ظلمکۍ تہ ستمن ہندۍ خیال   مشراوتو مارہ متیو

ییلہ مس چھہِ چاوان عاشقس   پر تہ پان ہوے باسان تس
ژہ تہِ پننہ اتھہ ستۍ لولہ مس   میہ تہِ چاوتو مارہ متیو

دل میون لولہ نارس اندر   یژ صاف گوو زٲلتھ کھۅچر
وۅنۍ لولہ بازارس اندر   مۅلناوتو مارہ متیو

چھکھ زندگی بخشاں کمن   یہ تہِ تازہ کرتن میون من
بے حیس گومت شونگمت چمن   وزناوتو مارہ متیو

ییلہ عقلہِ کور لولس جواب   ووتھ شور عالم گوو خراب
وزناوۍ متہِ فتنک یہ خواب   بییہ ساوتو مارہ متیو

پوشہ نولہ سندین آلون   گل پانہ گلۍ چھِکھ آلون
مہجور سنزہ کتھہ کیا لوَن   پرکھاوتو مارہ متیو

امچ وژنہ ہیت درایہ وۅنۍ صاف ننۍ ۔ پریتھ بندس منز چھہِ تریہ ہم قافیہ مصرعہ یس زن وژنہ کہ اکہ ہیتک معمول چھہ۔ ژورم مصرعہ چھہ ووج۔ عام طور چھہ وژنن منز ہیرہ بۅن ہوُے ووج آسان مگر
کینژن وژنن منز چھہِ حبہ خاتونہِ سندِ پیٹھے متنوع ووج تہِ میلان۔ مثلا یمن وژنن ہندۍ ووج:

وارۍ وین ستۍ وارہ چھس نو
ہنہِ لو ہنہِ لو ہنہِ لو
بو وِلہ ونے یارہ تے

زیر مطالعہ وژنہ چہ مخصوص فارمہِ منز چھہِ مہجورنۍ بییہِ تہِ کینہہ بٲتھ یمن منز بنم مشہور بٲتھ تہِ چھہ۔
ویسۍ یے سہ میون دلبر   شیریں کلام ییہ کر
یس کن وچھتھ ژلاں شر   سے گل اندام ییہ کر

ییہ نا سہ یار میونے   ژلہِ ہے میہ زونہِ گرونے
وندس قبیلہ کرونے   روزس غلام ییہ کر

یہ بٲتھ چھ وژنہ چہ چالہِ کلیات کس صفحہ 118 پیٹھ درج۔ وۅنۍ زن لیکھون یہ غزلہ چالہِ:
ویسۍ یے سہ میون دلبر شیریں کلام ییہ کر
یس کن وچھتھ ژلاں شر سے گل اندام ییہ کر
ییہ نا سہ یار میونے ژلہِ ہے میہ زونہِ گرونے
وندس قبیلہ کرونے روزس غلام ییہ کر

کانہہ وژن خالص غزلہ چالہِ لیکھنہ سیتۍ ما بنہِ سہ غزل؟ یتھے پاٹھۍ وچھون مہجور سند یہ مشہور بٲتھ تہِ کلیات کس صفجہ 127 پیٹھ۔
باغ نشاط کے گلو   ناز کران کران وۅلو
خندہ کراں کراں وۅلو   مختہ ہراں ہراں وۅلو

امی چالہِ چھہِ اسہِ نش محود گامی تہ رسول میرنۍ تہِ کٔژ وژن۔ یمن منز یم مشہور بٲتھ تہِ چھہِ:
کیا جان چھی شوبانے پرنور زہ دردانے
(محمود)
سوز دلک بہ کیا ونے روز دما بوز کنے
(محمود)
یارہ لوگتھ سنگ دل چانہ چھم جانک قسم
(رسول)
زلف زنجیر یارس ونس بو زار کوت گوم
(رسول)
جب آیا تو نے گھبرایا ہمار من الا جانو
(رسول)
یارہ رۅے ہاوتم برقہ تلی محرابے بمن لگیو
(رسول)

یمن منزتہِ چھہِ رسول میرنین ترین وژنن ہندۍ بند غزلکۍ پاٹھۍ شعر بنٲوتھ کتابت کرناونہ آمتۍ ۔ شاید آسن یم یتھے پاٹھۍ مسودن منز تہِ۔

جب آیا وژنہ کس مطلعس چھیہ سۅے بٲش یۅس مہجورنس سندس مطلعس چھیہ، یتھ پیٹھ رفیق رازن اعتراض چھہ کورمت۔
جب آیا تو نے گھبرایا ہمارا من الا جانو
دیا دل تو پراے ساتھ رلایی تن الا جانو

یہ مطلع وچھتھ تہِ چھہ باسان زِ اتھ منز آسہِ تن، من، بیترِ قافیہ تہ الا جانو ردیف۔ مگر ییلہِ اسۍ امہِ بٲتکۍ باقی شعر وچھان چھہِ اکھ چھہ یہ ننان زِ یہ چھہ نہ غزل بلکہ وژن تہ بییہ یہِ زِ تن، من چھہ نہ امیک قافیہ۔ حقیقت چھیہ یہ زِ غزلک فارم چھہ غزلس نزدیک (1) یمہ کنۍ سانین وژن شاعرن گڑبڑ اوس گژھان۔ تمن چھیہ نہ صنفی (ہیتی) امتیازن منز شاید تمہ رنگہ دلچسپی ٲسمژ یمہ رنگہ اسہِ چھیہ۔

ممکن چھہ یمن بٲتن منز ما آسہِ ہے یمو شاعرو شعوری یا غیر شعوری طور غزل وننک شروعات کورمت مگر وژن وننکۍ عادتن چھہِ مطلع پتہ باقی بٲتھ وژنہ چہ فارمہِ کن پھرۍ متۍ۔ کنہِ ساتہ چھہ یہ ونن مشکل گژھان زِ بٲتس ونوا وژُن کنہ غزل۔ مگر محض غزلکۍ پاٹھۍ وژنکۍ بند لیکھنہ ستۍ بنن نہ یم بٲتھ غزل۔ یتھے پاٹھۍ ہیکہِ نہ محض یہ کتھ کنہِ وژنس غزل بنٲوتھ زِ تتھ منز چھہ فارسی وزن ورتاونہ آمت۔ محمود گامی تہ رسول میرن چھہِ وژنہ ہا فارسی وزنن پیٹھ ونۍ متۍ۔

رفیق رازن قافیس پیٹھ اعتراض چھہ غزلہ کس حدس تام صحیح مگر چونکہ مہجورن زیر مطالعہ بٲتھ چھہ نہ غزل، لہذا چھہ یہ اعتراض پانے زایل گژھان۔کیا محمود گامی، کیا رسول میر، کیا عبدالاحد آزاد تہ کیا غلام احمد مہجور یم شاعر چھہِ ژکہِ وژن شاعر ٲسۍ متـۍ۔

رفیق رازُن بیاکھ سوال یس تمۍ امہِ کس وزنس متعلق تلمت چھہ۔ (تتھ پیٹھ کرو دوبارہ کتھ۔)

(1)
ہوئے مر کے ہم جو رسوا   ہوئے کیوں نہ غرق دریا
نہ کبھی جنازہ اٹھتا   نہ کہیں مزار ہوتا

جب وہ جمال دل فروز   صورت مہر نیم روز
آپ ہی ہو نظارہ سوز   پردے میں نہ چھپائے کیوں

یتھۍ ہوۍ غزل آسہ ہن سانین شاعرن وارہ کارہ وژن باسان۔

کاشر رسالہ واد (قسط 6) : رفیق راز

nay

واد رسالس منز چھہِ رفیق رازنۍ تہِ چھہِ کل پانژھ غزل  چھپان۔ زہ شمارہ 3 تہ تریہ شمارہ 6 ہس منز۔  راز سندِ غزلہ کہ مقبولیتکۍ ٲسۍ واریاہ وجہ، یمن منز ویز، واضح زبان تہ خیال ورتاونک ہنر شامل چھہ۔ رازن کٔر شہر سرینگرچ زبان (تہ محاورہ) کاشرِ شاعری منز  گۅڈنچہ لٹہِ  متعارف یتھ متعلق کینژن شود کاشر اظہار آسنک دھوکہ لوگ یمن منز علی محمد لون تہ اختر محی الدین ہوۍ بڈۍ ادیب تہِ شامل چھہِ۔

رفیق راز سندِ غزلکۍ لفظ، پیکر تہ استعارہ سٲری ٲسۍ ویدۍ تہ برونہہ کنکۍ تہ صاف تہ شفاف یمن منز نہ کُنہِ شکچ تہ شبہچ گنجایش ٲس۔ آہنگ تہ ردیف قافیہ کنۍ تہِ اوس سہ تم زمینہ تیار کران یمن منز یاد روزنچ، زیوِ پیٹھ پھرنچ تہ بجایہ خۅد معنہ ساوۍ آسنچ صلاحیت موجود ٲس۔ رازن کرۍ کینہہ لفظ  بار بار تہ رنگہ رنگہ ورتٲوتھ پننہِ شاعری ہندِ خاطرہ مخصوص۔ امۍ سندین عشقیہ تجربن ہنز  ایمایت ٲس شاعری سیتۍ دلچسپی تھاون وٲلس امۍ سندس ہم عمر طبقس خاص طور پانس سیتۍ پکناوان۔

راز  سنزِ شاعری منز چھیہ نہ کانہہ موضوعاتی دلچسپی نظرِ گژھان۔ امۍ سند زیادہ تر فوکس چھہ موجود ژہس پیٹھ تہ امی مجود ژہہ کہ درچہ منزۍ چھہ سہ انسانی تجربن ہنزہ ژھایہ تہ رایہ گاشراوان تہ تہِ کٔرتھ اتھ ژہس  لازوال بناوان۔ راز چھہ پرن وٲلس بدل کنہِ دنیاہس منز  منتقل کرنہ بجایہ تہندے دنیا گاشراوان تہ تبدیل کران۔ راز سندۍ غزلن دیت پرن وٲلس تمہ ساتہ تہِ یہ نہ تس دستیاب اوس۔ کینہہ شعر:

اکھ چشمہ جورۍ ٲس کراں زول راتھ تام
سۅے چشمہ جورۍ از تہِ سراپا مگر سوال

 اکھ دما بیوٹھ میہ نش آرہ پلس پیٹھ تہ وونن
پوت نظر دی نہ یہ ردیاو میہ وونمس نہ کہنی

 بہ زن یور کن  پتھرِ پیومت کھلاڑۍ
ژہ زن ٲنتھہ روس ہالہ میدان ہیو

 ژیہ چھے نا زنہے وۅش تہِ نیرتھ ژلان
ژہ تے چھکھ میہ ہیو عین انسان ہیو

گلابس ژھٹن زن چھہ گاشر سحر
کنڈس پیٹھ چھہ تارکھ تہِ لرزان ہیو

بہ زن گردِ اندر افق تا افق
ہوا زنتہ ازلے میہ زاگان ہیو

لامکاں وٲتھ کڈن فرمان بیاکھ
تالہ پیٹھ تھونم ظہرۍ اسمان بیاکھ

تار ییلہ سدرس لبو واتو اپور
ٲس وہرتھ آسہِ ریگستان بیاکھ

رفیق راز سنزہ چھیہِ زہ کاشرۍ شعرہ سۅمبرنہ شایع سپزمژہ – نے چھیہ نالاں تہ دستاویز۔ یمو منزہ چھہ گۅڈنکس ساہتیہ اکاڈمی ایوارڈ تورمت۔

من ندانم فاعلاتن فاعلات

عروض چھہ آہنگ چہ ضابطہ بندی ہند ناو۔ یہ ضابطہ بندی چھیہ پریتھ عروضس منز، خاص کر منظم عروضن منز یمن منز عربی فارسی عروض شامل چھہ۔ یہ چھہ پوز زِ نمونہ وزن (مثلا مفاعلن فعلاتن مفاعلن فعلن) چھہِ مشینی مگر زبانۍ ہندۍ یم متحرک تہ زندہ لفظ یمن نمونن پیٹھ گنڈنہ یوان چھہِ، تم چھہِ امہِ بنیادی آہنگ علاوہ پنن تہِ اکھ زندہ لسانی آہنگ تھاوان یتھ منز لہجہ تہ معنیک تہِ برابر دخل آسان چھہ۔ مطلب یہ زِ مفاعلن فعلاتن مفاعلن فعلن وزن اگرچہ مشینی چھہ اتھ پیٹھ وننہ آمتۍ غزل گژھن نہ مشینی آسنۍ تکیازِ میکانیکی آہنگ کنے ٲستھ تہِ گژھن نہ تم اکی لسانی تہ معنوی آہنگکۍ آسنۍ۔ اگر یُتھ صورت حال برونہہ کن ییہِ سۅ چھیہ لازما شاعر سنز کمزوری، یۅس خاص کر تکرار یا تقلیدک نتیجہ آسان چھہ۔ مثلا اتھ وزنس پیٹھ وننہ آمتۍ کاملنۍ غزل گژھن باقی شاعرن ہندین غزلن نش تہنزِ مخصوص زبانۍ کنۍ اکۍ سے عروضی نمونس پیٹھ ٲستھ تہِ لسانی آہنگ کہ لحاظہ مختلف آسنۍ۔ مثالی وچھن ترایہ کنۍ گژھن اتھ وزنس پیٹھ کاملنۍ ونۍ متۍ غزل تہِ اکھ اکس نش مختلف لسانی آہنگ ہیتھ آسنۍ۔ یہ نکتہ کرون بنمیو ترییو غزلو سیتۍ واضح ۔ اکھ غزل چھہ امین کاملن تہ بیاکھ رفیق رازن تہ بیاکھ شفیع شوقن۔ 

سہ وق سہ رٲژ پہر ییلۍ جگر وہاں آسی
بدن یہ ماز چھنتھ کرنز ہیو مۅژاں آسی
یہ لر تہ کانہِ لگاں کیل ہۅ لر تہ اڈۍ جہ فنا
تہِ پوشہ پان پنن بسترس سناں آسی
(امین کامل)

یِتھے چھہِ باگہ یواں کس مژر تہ خاموشی
سراں چھہ زندہ زوے کُس قبر تہ خاموشی
ژۅپارۍ زنتہ یہ چونے نظارہ بییہ نہ کہنی
ژۅپارۍ زنتہ یہ میانی نظر تہ خاموشی
(رفیق راز)

گژھن تہ اوس تمس گوو گژھتھ سہ آو نہ زانہہ
سیٹھا زمانہ گژھتھ آوہ آو دراو نہ زانہہ
لبن زٔلس چھہ ژشاں مول اندرہ باچھہِ کلا
ہنیوو گٹہِ منزے وۅگہ ووبۍ پھبیاو نہ زانہہ
(شفیع شوق)

یمن ترین غزلن ہند لسانی آہنگ چھہ نہ اکۍ سے مشینی وزنس پیٹھ ٲستھ تہِ کنے۔ یمن غزلن ہند انفرادی لسانی آہنگ بناونس منز ییتہِ یہندس مخصوص لفظیاتس، لفظن تہ تمن ہنزن آوازن ہندس دروبستس تہ مخصوص لہجس دخل چھہ تتہِ چھہ کنہِ حدس تام اتھ منز ردیف قافیہ تہِ مدد گار سپدان۔ امہِ علاوہ وچھو شوق سندین شعرن منز واقعاتی فعلن ہند ورتاو تہ اتھ مقابلہ رفیق راز نین شعرن منز واقعاتی فعلن نش احتراز، تہ کامل سندین شعرن منز شرطیہ فعل۔ یم سٲری لسانی پہلو چھہِ شعرک مخصوص آہنگ تعمیر کرنس منز مدد کران۔ وۅنۍ وچھون کاملنے بیاکھ غزل یس اتھۍ مفاعلن فعلاتن مفاعلن فعلن کس وزنس پیٹھ وننہ چھہ آمت:

یہ نار کیتھ چھہ الہی شہر شہر چھہ دزاں
عقل گمژ چھیہ دہے دہ اگر مگر چھہ دزاں
دزاں چھہِ بام پیواں ژینۍ ہیواں الاو کٹھین
گرس گرس چھیہ پلاں ژھٹھ نفر نفر چھہ دزاں

امہِ غزلک لسانی آہنگ چھہ یک دم کاملنہِ پتمہِ غزلہ نش مختلف تہ یتھے پاٹھۍ راز تہ شوق نہِ غزلہ نش تہِ۔ نکتہ چھہ یہ زِ وزنچ مشینی نوعیت (یۅس پریتھ قسمہ کہ عروضچ بنیاد چھیہ) چھیہ نہ یتھین غزلن برونہہ کنہِ کانہہ معنی تھاوان۔ یتھین غزلن منز چھہِ مشینی وزنہ بجایہ یمن غزلن ہنز لفظیات، آوازن ہنز دروبست، معنیاتی فضا تہ لہجک آہنگ پرن والۍ سندس ذہنس آوراوان۔ مگر ییلہِ کانہہ شاعر یتھین غزلن ہنز محض تقلید کرنہِ بیہان چھہ، عروض کہ مشینی نوعیتک احساس پیدہ گژھن چھہ لازمی۔ یہ احساس چھہ تیلہِ تہِ سپدان ییلہِ اسۍ رسالن منز اکی لسانی آہنگکۍ تہ لہجکۍ غزل صفحہ پتہ صفحہ وچھان چھہِ۔ یہ احساس چھہ نہ عربی فارسی عروض سے سیتۍ مخصوص بلکہ ہیکہِ یہ کنہِ تہِ عروضس منز ممکن ٲستھ۔ اتھ چھہ نہ صرف عروض کس ورتاوس سیتۍ رشتہ بلکہ لفظیاتس تہ لہجس سیتۍ تہِ۔ مثالہِ پاٹھۍ نمون اسۍ کاملن بنم غزل یس فاعلاتن مفاعلن فعلن کس وزنس پیٹھ چھہ:

نندرِ اندر نندر خراب تہِ کر
با سکوں روز اضطراب تہِ کر
سونچہ سودرکۍ ملر تلکھ ہمراہ
شیچھ یہ باوی دلک حباب تہِ کر 

اتھۍ غزلس پیٹھ ییلہِ راہی ہیو شاعر پنن غزل نہ صرف وزنہ کنۍ تہ قافیہ کنۍ بلکہ لہجہ کنۍ تہِ تقلید کٔرتھ ونان چھہ، یک دم چھہ تکرارک احساس گژھان۔ اگر اتھ آہنگس ساری شاعر یتھے پاٹھۍ پتہ لگن یۅہے احساس گژھہِ عروض کس مشینی احساسس منز تبدیل۔ وچھوکھ راہینۍ شعر:

سودرہ تارس تراں سراب تہِ سر
ٹورۍ اسناہ کراں گلاب تہِ ہر
چانہِ جسمچ سبز سپار پٔرم
میانہِ روحک کرہن عذاب تہِ زر 

نہ صرف چھہ اتھ منز کاملنہِ غزلہ کہ بنیادی لہجک آہنگ برقرار تھاونہ آمت بلکہ چھہ قافیہ تہِ برقرار تھاونہ آمت۔ اتھ غزلس منز چھہ کاملنہِ بییہِ اکہ غزلک ول تہِ ورتاونہ آمت۔ یعنی دوگن قافیہ۔ وچھون سہ غزل تہِ۔

چشمے تلکھ اضطراب ہاوکھ
دم دتھ تہِ کوتاہ حباب تھاوکھ
ماگس اندر تے امار برادی
ژٹۍ ژٹۍ حریرس گلاب چھاوکھ 

میانہِ پیٹھمہِ بحثک مطلب چھہ یہ زِ جان شاعر سندس اتھس منز چھہ نہ عروضک مشینی پاس نظری یوان۔ سہ چھہ پننہِ لہجہ تہ لفظیات چہ انفرادیژ تہ تحرک سیتۍ عروضک سہ پاسے نظرن دور کران۔ کامل، راز تہ شوق سندین غزلن منز چھہ نہ وزنہ کس مشینی نمونس منز کانہہ انحراف کرنہ آمت۔ تمہِ وارے چھہ یمن تریشونی غزلن منز آہنگک تنوع میلان۔ شاعری ہندِ آہنگک تنوع ہیکہِ لسانی انفرادیژ تہ لسانی تنوع علاوہ زحافن ہندِ ذریعہ یا عروضی انحرافو سیتۍ تہِ پیدہ کرنہ یتھ۔ عربی فارسی عروضس منز چھہِ آہنگ زیٹھین ژھۅٹین ہیجلین ہنزِ اکہ خاص ترتیبہِ سیتۍ پیدہ کرنہ یا گنڈنہ یوان۔ لہذا یمن ہنز یہ ترتیب قایم تھاونۍ چھیہ امہِ عروضچ اولین ضرورت۔ تمن عروضن منز ییتہِ عروضچ (آہنگ پیدہ کرنچ) بنیاد ژھۅٹین زیٹھین ہیجلین ہندس ترتیبس پیٹھ چھیہ نہ، تمن منز اگر ہیجلۍ اورہ یور تہِ گژھن کانہہ فرق پییہ نہ۔ مگر یتھ عروضس منز زیٹھین ژھۅٹین ہیجلین ہنز خاص ترتیب ورتاونہ یوان آسہِ، سۅ برقرار تھاونۍ چھیہ ضروری۔ البتہ اکہِ خاص ترتیبہِ سیتۍ پیدہ کرنہ آمت آہنگ برقرار تھٲوتھ رکھہِ ڈلنس چھہِ زحافہ ورتاو ونان۔ یعنی کینژن جاین چھہ تنوع پیدہ کرنہ کہ غرضہ ترتیبہ منز تبدیلی کرنک اجازت۔ پریتھ کانہہ شاعر چھہ نہ آہنگن ہند یوت ماہر آسان زِ سہ کرِ نوۍ نوۍ زحافہ ایجاد۔ اوے چھہِ پریتھ بحرس تہ وزنس عروضی کتابن منز کینژن مخصوص زحافن ہنز نشاندہی وتھ ہاونہ خاطرہ کرنہ آمژ تاکہ مجبوریو، مقصدو علاوہ ییہِ مختلف زبانن ہندِ آہنگک تہِ خیال تھاونہ۔ زحافہ ورتاوہ سیتۍ چھہِ نہ صرف اکہ وزنہ پیٹھہ نوۍ وزن بناونہ یوان بلکہ چھہ اکۍ سے وزنس منز آہنگک تنوع تہِ پیدہ کرنہ یوان۔ امہِ قسمک زحافہ ورتاو چھہِ نہ سانۍ شاعر عروض نہ زاننہ کنۍ کٔرتھ ہیکان۔ یمن زحافہ تبدیلین ہند اجازت چھہ زیادہ تر عروض تہ ضربس تام محدود تاکہ وزنک کلہم آہنگ روزِ برقرار۔ مگر کینژن وزنن منز ہیکہِ امہ قسمچ تبدیلی باقی ارکانن منز تہِ سپدتھ تہ آہنگس پییہ نہ تنوع علاوہ کانہہ فرق۔ مثلا کاملن یہ شعر:

ڈیر چھی سخنن گمتۍ نیر تہ بیہہ آبس منز
فاعلاتن فاعلاتن فعلاتن فعلن
معنہ حرفن چھہ ہراں تیزاں چھیہ تیہہ آبس منز
فاعلاتن فعلاتن فاعلاتن فعلن

وچھو اتھ منز کتھہ پاٹھۍ چھہِ فاعلاتن تہ فعلاتن (بہ تحریک عین) آزادی سان اکھ اکہ سیتۍ بدلاونہ آمتۍ۔ امہ تبدیلی سیتۍ یودوے دۅن مصرعن ہندس آہنگس منز تنوع پیدہ گومت چھہ مگر کنہِ قسمک اختلاف یا بد آہنگی چھیہ نہ پیدہ گمژ۔ ضرورت چھیہ یہ زِ نہ صرف ین جایز زحافہ کھلہ پاٹھۍ ورتاونہ بلکہ گژھن تتھۍ انحراف تہِ کرنہ ینۍ یمن ہند اجازت روایتی عروضی اصول چھہ نہ دوان مگر یم یا تہ زبانۍ ہندِ مخصوص آہنگہ کنۍ یا کنہِ معنوی مجبوری تہ تنوع کہ غرضہ کنۍ مستحسن آسن۔ یژھہ تبدیلی کرنہ خاطرہ چھیہ دۅشونی عروضس تہ زبانۍ ہندس آہنگس پیٹھ نظر آسنۍ ضروری۔ شاید چھہ یتھنے انحرافن مدنظر "کاشر شاعری تہ وزنک صورت حال” مقالک مصنف ونان:

’’عربی فارسی عروضہ کس محض مشینی ظاہرس آویزہ روزنس چھہ نتیجہ نیران زِ اسۍ چھہِ بعضے رتین کیو بڈین شاعرن ہندۍ کینہہ شعر وچھتھ پریشان ہوۍ گژھان زِ تمن کُس تُل کرو یا میژ ہیمو؟‘‘ (ص ۵۳)

امہِ اقتباسہ پتے چھہ سہ کینژن شعرن ہنزہ مثالہ دوان یمن منز رسول میرن یہ شعر تہِ چھہ۔

شہمارۍ زلفو نال وولہم رود افسانے
وۅنۍ ونتہ کم افسانہ پرے بال مرایو

اگر یہ مفعول مفاعیل مفاعیل فعولن وزنس پیٹھ نمون، یہ چھہ نہ مشینی طور پورہ وتران بلکہ چھہ کینژن جاین پھٹان۔ مگر اتھ منز چھیہ نہ پھٹنہ باوجود کانہہ بد آہنگی محسوس سپدان۔ یمیک وجہ اکھ الگ بحث چھہ تہ ییتہِ نس ونو اسۍ زِ یہ شعر چھہ یتھ کتھہِ کن خوب اشارہ کران زِ رکھہِ ڈلن یا زحافہ ورتاون یا ایجاد کرن کتھہ پاٹھۍ ہیکہِ آہنگ کہ لحاظہ مستحسن ٲستھ۔ شعر پھٹنہ باوجود چھہ نہ آہنگ مجروح گژھان۔ کانہہ لفظ ہیکہِ نہ اورہ یور ڈلتھ۔ کانہہ تصحیح چھیہ نہ ممکن۔ یہ شعر چھہ لفظن ہنزِ چستی تہ بندشہِ ہنز بہترین مثال پیش کران۔ اتھ برعکس نیون راہی ین یہ شعر:

نہ ابتدا نہ پریتھنپا نہ انتہا باسی
وزکھ اگر ٹھینوہ روس زانہہ میہ ونۍ زِ کیا باسی

یمن دۅشونی مصرعن منز چھہ نہ وزنس منز کانہہ انحراف کرنہ آمت تہ نہ چھہ کانہہ زحافہ ورتاونہ آمت۔ مگر وزنہ کنۍ دۅشوے مصرعہ مشینی طور برابر ٲستھ تہِ ہیکون نہ گۅڈنیک مصرعہ دویمس مصرعس ہم آہنگ مٲنتھ۔ بلکہ چھہ دویم مصرعہ کنہِ حدس تام بد آہنگ، تکیازِ اتھ منز چھیہ گۅڈنکس مصرعس مقابلہ لفظن ہنز بھرمار۔ دویم وجہ یہ زِ گۅڈنکہِ مصرعک آہنگ قایم تھاونہ خاطرہ چھہ دویم مصرعہ سیٹھا وُژھہِ تہ تیز رفتاری سان پرُن پیوان ییلہ زن شعر امہِ جلدی ہند کانہہ معنوی مطالبہ چھہ نہ کران بلکہ چھہ یہ مصرعہ کنہِ تھکہ وراے پشہ پیٹھہ شین والنس یا بیگارۍ نکھہ والنس برابر۔ راہی نہِ امی غزلک بیاکھ شعر تہِ وچھون:

بہ چھس نہ ونہِ تہِ سۅ کنۍ شیچھ تسنز ہیکاں مۅلوتھ
ژہ کیا کرکھ اگر ابلیس خیر خواہ باسی

اتھ شعرس منز تہِ چھہ گۅڈنیک مصرعہ مشینی طور وزنس برابر ٲستھ دویمہِ مصرعہ کہ آہنگہ نش زیٹھان۔ یم مصرعہ تہِ چھہِ نہ مکمل طور ہم آہنگ۔ راہینۍ یم شعر چھہِ وزن مشینی طور ورتاونک بیاکھ پہلو پیش کران۔ یعنی شعرک لسانی آہنگ اوک طرف ترٲوتھ، وزنہ برابری کرنۍ۔ یمہِ قسمچ خالص وزنہ برابری یمن شعرن منز میلان چھیہ سۅ چھیہ نہ لسانی آہنگک رت نمونہ پیش کران۔ ممکن چھہ یہ آسہِ راہی سنز شعوری کوشش مگر یہ ہیکہِ اظہارس یعنی لفظ وبیانس پیٹھ دسترس نہ آسنک نتیجہ تہِ ٲستھ۔ یوت تام نہ شاعرس یہ دسترس حاصل سپدِ توت تام چھہ سہ عروض کہ جبرکۍ بداد دوان۔ یمہِ ساتہ مولانا رومی ونان چھہ : شعر می گویم بہ از قند و نبات/من ندانم فاعلاتن فاعلات سہ چھہ اتھۍ مشینی مزازس کن اشارہ کران۔ مولانا چھہ نہ عروضکۍ بداد دوان یا امہِ کہ جبرچ کتھ کران بلکہ چھہ سہ یہ ونان زِ بہ چھس قندہ تہ نباتکۍ پاٹھۍ میٹھۍ شعر ونان یعنی پر آہنگ شعر۔ سہ چھہ نہ یم میٹھۍ شعر عروض نیبر نیرتھ یا عروض کین اصولن تجاوز کٔرتھ ونان بلکہ چھہ مولاناہن عربی فارسی عروض پریتھ پابندی سان ورتومت۔ پابندی سانے اوت نہ بلکہ جایز زحافہ ورتٲوتھ تنوع سان تہِ۔ تسند مقصد چھہ یہ زِ سہ چھہ نہ فاعلاتن فاعلاتنچ مشینی ضابطہ بندی یا وزنہ برابری نظرِ تل تھٲوتھ شعر ونان۔ یعنی سہ چھہ نہ زبردستی کٔرتھ لفظن منز وزنہ برابری کران۔ اگر تہِ کرنہ ییہِ تیلہ گژھن بد آہنگ شعر موزون یمن ہنز مثال اسہِ راہی سندین پیٹھمین شعرن منز وچھ۔ "من ندانم” گوو نہ "بہ زانہ نہ”۔ سہ گوو لفظی معنی، مگر یہ چھہ شعر۔ مولانا اوس وارہ کارہ عروض زانان تہ ورتاوان۔ امیک مطلب گوو سہ چھہ لفظن ہندس میچھرس یعنی لسانی آہنگس اہمیت دوان، فاعلاتن فاعلات کس ژھرس مشینی گردانس نہ۔ راہینۍ شعر اگر وزنہ کس مشینی گردانس پیٹھ پورہ وتران چھہِ، تاہم چھہِ نہ تم زبانۍ تہ آہنگک میچھر پیدہ کٔرتھ ہیکان یمچ کتھ مولانا پیٹھمس شعرس منز کران چھہ۔