{یا}، {نتہ} تہ {کنہ}

 

grammar

شفیع شوق چھہ "کاشریک گرامر” کتابہِ منز جملیاتس تحت (2۔2۔5۔5۔) پیٹھمین ترین لفظن ہندس استعمالس بحیثیت کنجکشن جان پاٹھۍ واضح کران، مگر دۅن کتھن پیٹھ روزِ یہ تبصرہ شاید مفید۔

شوق چھہ لیکھان: "{یا} بجایہ ہیکو کُنہِ کُنہِ {نتہ} ورتٲوتھ۔ {یا} تہ {نتہ} چھہِ ہم معنی بنان۔ فرق چھیہ یہ زِ {نتہ} چھہ منفی واٹت۔”

مثال چھہ دوان یم زہ جملہ:

  • ژہ کرۍ زِ شامن فون یا کرۍ زیم ای میل۔
  • ژہ کرۍ زِ شامن فون نتہ کرۍ زیم ای میل

میانہِ خیالہ چھہِ نہ یم زہ ورتاو ہم معنی۔ {یا} بجایہ چھہ پیٹھمس جملس منز {نتہ} مگر دۅشونی جملن ہند معنی چھہ نہ کُنے۔ {یا} چھہ زہ آپشن دوان یتھ منز دۅشوے صحیح تہ ممکن چھہِ۔ {نتہ} چھہ گۅڈنکہ آپشنچ کمزوری ہاوان۔ گۅڈنکہ آپشنک وقوع چھہ مشکوک۔ یعنی اگر کنہِ وجہ کنۍ فون کرن ممکن آسہ نہ  یا زحمت بنہِ، تیلہ کرۍ زِ ای میل، یتھ منز متکلمس مخاطب سندِ خاطرہ آسایش باسان چھیہ۔۔ لہذا چھہ {نتہ} شرطیہ کنجنکشن بنان۔ گۅڈنکس جملس منز چھہِ دۅشوے انتخاب برابر ممکن، دویمس منز چھہ یہ شرطیہ۔ امہ کنۍ ہیکو اسۍ ؤنتھ زِ یم چھہِ نہ ہم معنی۔

{کِنہ} کنجکشنس متعلق چھہ شوق ونان "{کِنہ} چھہ {یا} ہکۍ پاٹھۍ واٹت بٔنتھ متبادل صورت ہاوان۔ یہ ہیکہ دۅن سادہ بیانن، اکس بیانس تہ اکس سوالس، اکس حکمس/عرضس واٹون کٔرتھ۔”

یمن ہنز مثالہ چھہ یتھہ پاٹھۍ دوان

  • ژہ کر کمپیوٹرس پیٹھ کٲم کِنہ بہ کرہ پانے۔
  • سہ آو پیدل کِنہ سکوٹرس پیٹھ!
  • ژہ نیر سلی کِنہ تس پرارکھ؟
  • ژہ بناوکھنا چاے کِنہ بہ بناوہ پانے

یمو مثالو پتہ چھہ شوق ونان "لہجہ بدلاونہ سیتۍ ہیکن {کِنہ} والۍ جملہ سوال تہِ بٔنتھ۔”

امہ بیانہ سیتۍ چھہ شوق پیٹھمین ژۅن ورتاون پانے پھیش دوان۔ اگر یم سٲری لہجہ بدلی سیتۍ سوال بنن، اکھ اہم کتھ چھیہ برونہہ کن یوان زِ {کِنہ} چھہ تیلہ ژکہِ سوالیہ کنجکشن۔ یعنی یہ چھہ دۅشونی صورتن منز سوال قایم کران۔ دویو منزہ ہیکہِ صرف اکھ انتخاب صحیح ٲستھ۔ {یا} کس ورتاوس منز چھہ دۅشوے صحیح آسان۔

لہذا، {کِنہ} چھہ بنیادی طور سوالیہ کنجکشن، لہجہ بدلٲوتھ ہیکنس شاید تم ورتاو تہِ نیرتھ یم شوقن دتۍ متي چھہِ۔ یعنی یہ شوق ونان چھہ تمیک پھرتھ چھہ صحیح۔

یمن کنجکشنن ہندۍ بنیادی ورتاو چھہ یتھہ پاٹھۍ:

{یا} دۅن صحیح بیانن درمیان ورتاونہ یوان

{نتہ} اکس کمزور تہ متبادل بیانس درمیان ورتاونہ یوان

{کِنہ} دۅن سوالیہ بیانن درمیان ورتاونہ یوان

گوم تہ گۆوم

میٲنس اکس شعرس پیٹھ (تک بندی پیٹھ) کٔر اکۍ دوستن فیس بکس پیٹھ کمینٹ۔ شعر چھہ

متھ گوۆم لیکھہ غزل از بہ تہِ جانانا ہیو
مصرعہ طرحک چھہ وچھان دولہ میہ مشرانا ہیو

کمینٹ اوس گوم چھہِ ونان، گوۆم چھہِ نہ۔ میہ دوپ بہ ونہ یمن دۅن لفظن ہندس گرامرس متعلق کینہہ کتھہ یم نہ مثلا شفیع شوق سندس یا باقی گرامرن منز وننہ آمژ چھیہ۔ یہ چھہ گرامرک اکھ سبق۔

تم سٲری لفظ (فعل) یم ماضی چہ شکلہِ پیٹھ شخصاونہ یوان چھہِ، تمن منز چھہ عام طور اُم (واحد متکلم سندِ خاطرہ) جوڑنہ یوان۔ مثلا یم لفظ:

کۆر + اُم = کۆرم

بیوٹھ + اُم = بیوٹھم

پۆر + اُم = پۆرم

زول + اُم = زولم

یہ چھہ اصول۔ مگر اصولن چھہِ کینہہ استثنا تہِ آسان۔ وچھوکھ یم لفظ:

گۆو + اُم = گۆوم

آو + اُم = آُووم

دراو + اُم = دراوم

مگر اسہِ چھیہ پتاہ یم چھیہِ نہ صحیح شکلہ۔ یمن ہندِ بدلہ چھہِ گوم، آم تہ درام ونان۔ کیازِ؟ تکیازِ یمن لفظن منز چھہ پیٹھمہِ اصولک استثنا کٲم کران۔ استثنا تہِ چھہ اصولے آسان۔ یعنی اصولس اندر بیاکھ اصول۔ استثنا چھہ زِ یمن لفظن (ماضی فعل) اندس پیٹھ /و/ آواز یوان آسہِ تمن منز چھہ یہ عمل سپدان:

گۆو + اُم = گۆوم  > گۆ (و+ اُ) م > گوم

آو + اُم = آُووم > آ (و+ اُ) م> آم

دراو + اُم = دراوم > درا (و+ اُ) م > درام

یمن لفظن منز چھہ /و/ تہ جوڑنہ ینہ والہِ /اُم/ لاحقہ ہک پیش ،حذف سپدان۔ یم چھہ غیب گژھتھ پتھ کن پننۍ اکھ نشانی تراوان، سہ گۆو یہ زِ اگر لفظس منز ژھۆٹ مصوتہ آسہِ، سہ چھہ زیٹھراونہ یوان۔ اتھ عملس چھہِ صوتیاتس منز فونولاجکل پروسییس تحت مصوتہ زیچھر ونان۔

یمن لفظن ہنز معیاری شکل چھہ گوم، آم، درام بیترِ مگر کنہِ کنہِ ساعتہ چھہِ اسۍ یمن ہنزہ غیر معیاری شکلہ تہِ بوزان۔ میہ ورتٲو پننس شعرس منز یہے غیر معیاری شکل۔ وجہ یہ زِ بہ اوسس اتھ شعرس منز لاپروایی (glibness) پیدہ کرُن یژھان یمہ کنۍ یہ لفظ تہ یہ مضون میہ اۆن۔ گوم بدلہ گۆوم چھہ آکورڈنیسس کن اشارہ یس اتھ شعرس منز غزلہ چہ جذباتیت دور تھاوان چھہ۔ یہ غزل یُس پیروڈی ہند عنصر ہیتھ چھہ، چھہ عام غزلہ چہ نرمی، نزاکژ، رنج تہ افسردگی، تہ ناسٹلجیاہس برعکس۔

کاشرِ گرامرک اکھ سبق

"میانہِ زندگی ہند مقصد سپد پورہ۔”

"میانہِ زندگیہِ ہند مقصد سپد پورہ۔”

سوال چھہ یہ زِ یمو دۅیو جملو منزہ کُس اکھ چھہ صحیح۔ اگر اسی رسالن تہ کتابن دونژھ دمو، اسہِ لگہِ یہ پتاہ زِ گۅڈنکس جملس منز یتھہ پاٹھۍ لفظ /زندگی/ ورتامنہ آمت چھہ، سہ چھہ زیادہ عام۔ تہ دۅیمہ جملک لفظ /زندگیہِ/ چھہ اتھ سیاقس منز شاید پتمٮن وُہن پٕنژہن ؤرین منز ورتاوُن شروع سپدمت تہ سہ تہِ خاص کر کینژنے ادیبن ہندین لیکھن منز۔سوال چھہ صحیح کیا چھہ؟

وارہ سٔنتھ وچھو اسۍ زِ زندگی لفظک یہ ورتاو چھہ املاہس سیتۍ تعلق تھاوان تہ گرامرس سیتۍ تہِ۔ گۅڈہ دمو اسۍ امہ کس گرامرس ووٚن۔ گرامر کٮن اصطلاحاتن منز کیا ونو اسۍ یمن جملن منز زندگی لفظہ کس استعمالس؟ کاشرس گرامرس منز چھہ اسمن (ناوتٮن) سیتۍ حالت اضافی (posessive) یتھہ پاٹھۍ ظاہر کرنہ یوان:

مذکر اسم/مذکر اسم:
چانہِ خیالک (مذکر) گاش (مذکر) —  (خیال+اُ+ک)

مذکر اسم/مونث اسم:
چانہِ خیالچ (مذکر) روشنی (مونث) —  (خیال+إ+چ)

مونث اسم/مذکر اسم:
میانہِ نظرِ (مونث) ہند گاش (مذکر) — ( نظر+اِ+ہند)

مونث اسم/مونث اسم:
میانہِ نظرِ (مونث) ہنز روشنی (مونث) — ( نظر+اِ+ہنز)

یمن جملن منز چھہِ /خیالک/، /خیالچ/، /نظرِ ہند/ تہ /نظرِ ہنز/ لفظ حالت اضافی علاوہ حالت فاعلی (oblique case) تہِ ظاہر کران۔ مونث اسمن پتہ کنہِ چھہ اتھ سیاقس منز /اِ/ جوڑنہ یوان۔ مثلا:
نظر>نظرِ ہند/ہنز؛ ناو>ناوِ ہند/ہنز؛  رگ>رگہِ ہند/ہنز؛  شکل>شکلہِ ہند/ہنز  مگر اسۍ کیازِ چھہِ نہ عام پاٹھۍ کینژن مخصوص طرزہ کٮن اسمن سیتۍ یہ /اِ/ جوڑان؟ تہ رحمن راہی، رتن لال شانت تہ شفیع شوق کیازِ یمن مخصوص لفظن تہِ پتہ کنہِ تہِ یہ /اِ/ جوڑان؟ یعنی تم کیازِ چھہِ لیکھان:

مستی ہند بدلہ مستیہ ہند
ہنرمندی ہند بدلہ ہنرمندیہ ہند
شاعری ہند بدلہ شاعرییہ ہند

خۅد اعتمادی ہند بدلہ خۅد اعتمادیہ ہند؟  یم سٲری چھہ تم اسم یم زیٹھس /ای/ مصوتس  (vowel)پیٹھ اند واتان چھہِ۔ یہ مصوتہ چھہ زیوٹھ تہ /اِ/ ژھۅٹہِ مصوتک جورہ۔ دۅشوے چھہِ ٲسہ کس برونہمس حصس منز اکی طریقہ بناونہ یوان، صرف یمہ فرقہِ سان زِ اکھ چھہ ژھوٚٹ تہ بیاکھ زیوٹھ۔

gorillasکاشرس منز چھہ یم لفظ فارسی (اردو) پیٹھہ آمتۍ۔ اسہ یُس قاعدہ حالت اضافی تہ حالت فاعلی ظاہر کرنہ خاطرہ اوس، اسہِ لگوو سہ یمن لفظن پیٹھ تہِ۔ مگر مسلہ اوس یہ زِ یمن لفظن پتہ کنہِ ٲس تمی مصوتچ زیٹھ شکل یُس اسۍ یمہ حالژ ظاہر کرنہ خاطرہ ورتاوان چھہِ۔ یعنی /زندگی/ لفظچ ٲخری آواز /ای/ چھیہ  /اِ/ مصوتچی زیٹھ شکل۔حقیقت چھیہ یہ زِ زندگیہ:  /زندگ (ای + اِ)/ لفظک پھور چھہ مشکل تکیاز‏ اتھ پتہ کنہِ یمہ آوازہ چھیہ تم چھیہ ٲسہ چہ اکی جایہ، اکی طریقہ کڈنہ یوان۔ اکھ آواز  کٔڈتھ، پتہ بیاکھ آواز تتھۍ جایہ، تمی طریقہ کڈنہ خاطرہ چھیہ ٲسچ حالت تمہ حالژ نش ڈٲلتھ دبارہ واپس اننچ ضرورت پیوان، لہذا چھیہ یہ پھورس مشکل بناوان۔ اصول چھہ یہ زِ یوٚت تام زبانۍ ہنزن آوازن ہند تعلق چھہ اکی یا ہشی آوازِ ہندِ تکرارہ بہ نسبت چھیہ اکہ آوازِ پتہ بیاکھ مختلف آواز کڈنۍ آسان۔

ییلہِ یہ سچویشن آسہِ، زبانۍ ہنزِ صوتیاتی عملہِ منز چھیہ کمی بیشی ہنزہ زہ صورژ ممکن سپدان۔ اکس صورژ منز چھیہ یم ہشیۍ آوازہ (ای تہ اِ) اکھ اکس نش ژھٮن دتھ الگ کڈنہ یوان، تہ دوٚیمہِ صورژ منز چھیہ یمو منزہ اکھ (زیادہ تر دوٚیم) آواز یکسر تراونہ (ختم) کرنہ یوان۔

اسۍ تلون گۅڈنچ صورت۔عام طور چھیہ اکھ بیاکھ آواز یۅس شدید طور مختلف آسہِ نہ، یمن دۅن آوازن منزس تھاونہ یوان۔ مثلا (زندگ+ای+اِ) ہنزن /ای/ تہ /اِ/ آوازن درمیان چھیہ اکھ نزدیکی آواز نیم مصوتہ /ی/ تھاونہ یوان۔ /ی/ نیم مصوتہ(semi-vowel)  گژھہِ نہ /ای/ مصوتس سیتۍ گڈ مڈ کرنہ یُن۔ /ای/ چھہ مصوتہ تہ /ی/ نیم مصوتہ یُس مصمتچ (consonant)کٲم دوان چھہ۔ بہرحال، یہ نیم مصوتہ یمن دۅن آوازن منزس تھاونہ سیتۍ چھیہ زندگی لفظچ اضافی تہ فاعلی حالت یہ بنان:

(زندگ+ای+ی+اِ>زندگی+یہِ)۔ اتھ صوتیاتی عملہِ منز چھہ /ای/ مصوتک زیچھر راوان تہ یہ چھہ /ای/ بدلہ /اِ/ مصوتس منز تبدیل گژھان تہ لفظچ ٲخری صوتیاتی شکل چھیہ (زندگ+ اِ+ی+اِ) بنان یعنی زندگِیہِ۔ لہذا چھہ نہ زندگیہ‏ لفظچ صحیح ژھٮن بندی (زندگی+اِ) بلکہ (زندگ+اِ+یہ)۔ یہ چھیہ سۅے شکل یتھ رحمن راہی، رتن لال شانت، شفیع شوق، بیترِ ورتاوان چھہِ۔

دوٚیم صورت چھیہ یہ زِ (زندگی+اِ) لفظہ کیو دۅیو متصل (ای تہ اِ) مصوتو منزہ چھہ ٲخری مصوتہ ترٲوتھ مسلہ ختم کرنہ یوان،تہ زندگی لفظچ اضافی تہ فاعلی حالت چھیہ کُنہِ کمی بیشی روٚس خۅد زندگی بنان۔ یہ چھیہ سۅ صورت یۅس عام طور املایی ورتاوس منز چھیہ، بلکہ عام بول چالس منز تہِ ورتاونہ یوان چھیہ۔

گرامر تہ صوتیاتی نقطہ نظرِ کنۍ چھیہ دۅشوے شکلہ ممکن، مگر وچھن چھہ یہ زِ ورتاوس   (usage) منز کیا چھہ؟ زبان چھیہ نہ متروکاتن ہنز تجدید۔ اگر کانہہ صوتی فارم مشراونہ یوان چھیہ تتھ چھہ کانہہ نتہ کانہہ وجہ آسان۔ /زندگیہِ ہند/ بدل /زندگی ہند/ ورتاو عام گژھنس تہِ چھہِ کینہہ وجہ یم یتھہ پاٹھۍ چھہِ۔

اکھ وجہ چھہ کاشرِ زبانۍ ہند سہ رجحان یمیک ذکر بہ بار بار کاشرِ عروض کہ تعلقہ کران چھس۔ کاشرس منز چھہ لفظن پتہ کنیک ژھوٚٹ مصوتہ تیوت ہلکہ زِ یہ چھہ یا تہ تشدیدِ نتہ تالریژ منز مۅژان۔ یعنی زندگیہِ (زندگی +اِ) لفظچ (اِ) آواز چھیہ تیژ سۅتان زِ یہ چھیہ تقریبا ختم گژھان۔ یہ آواز چھہِ اسۍ صرف پننس ذہنس منز تصوراتی طور بوزان۔ امیک چھہ صرف تصور۔ یہ چھہ اکھ وجہ زِ /زندگیہِ ہند/ بدلہ کیازِ میول /زندگی ہند/ ورتاوس قبول عام۔ بیاکھ وجہ چھہ کاشرِ زبانۍ ہندس ہیجلۍ ساختس سیتۍ تعلق تھاوان۔ کاشرِ زبانۍ ہندٮن لفظن ہنز غالب ہیجلۍ ساخت چھیہ اکھ ہیجل، زہ ہیجلۍ تہ تریہ ہیجلۍ۔ زندگی لفظچ ہیجلۍ تعداد چھیہ تریہ /زن۔د۔گی/ ییلہ زن زندگیہِ لفظچ ہیجلۍ تعداد چھیہ ژور /زن۔د۔گِ۔یہ/۔ لفظن منز ژور ہیجلۍ آسنۍ چھیہ نہ کاشرِ زبانۍ ہنز بنیادی خصوصیت۔ لہذا اگر باقی زبانو پیٹھہ لفظ أنتھ تمن صرفی عملہِ کنۍ ہیجلۍ تعداد ہرِ کاشر زبان چھیہ اگر ممکن آسہِ تم کم کرنہ چہ وتہ کڈان۔ چونکہ گرامر تہ صوتیاتی نقطہ نظرِ کنۍ چھیہ (زندگی ہند تہ زندگیہ ہند) دۅشوے شکلہ ممکن، سانہِ زبانۍ ہنزِ ہیجلۍ تعدادہ چہ ترجیح کنۍ سپز گۅڈنچ صورت عام۔ یعنی /زندگی ہند/ ترکیب چھیہ اسہِ زیادہ لسانی آسایش فراہم کران۔

کاشرس منز چھہِ ژور ہیجلۍ والۍ سیٹھا کم لفظ۔ یم چھہِ تم چھہِ دوٚیمیو زبانو پیٹھہ آمتۍ۔

مثلا    صوتیاتی /صو۔تِ۔یا۔تی/ یا خصوصیت /خ۔صو۔صِ۔ یت/

اسٚۍ چھہِ اکثر یتھٮن لفظن ترٮن ہیجلٮن منز موٚژراونچ کوشش کران۔ /صو۔تِ۔یا۔تی/ چھہ /صوت۔یا۔تی/ بنان تہ یتھے پاٹھۍ چھہ /خ۔صو۔صِ۔یت/ تہِ ترٮن ہیجلٮن منز موٚژان /خ۔صوص۔یت/۔

تہِ کٔرتھ چھہِ اسہِ یتھۍ ہوۍ لفظ ژۅن ہیجلٮن منز قبول کرۍ متۍتکیازِ یمن ہندس تلفظس منز چھہ نہ (ہشیۍ آوازہ متصل آسنہ کنۍ) پھورک سہ مخصوص صورت حال پیش یوان یُس مثلا زندگیہِ، شٹھگیہِ، فراوانیہِ لفظن منز یوان چھہ۔

ٲخرس پیٹھ کرہ بہ زندگی/زندگیہ؛ شاعری/شاعریہ ہوٮن لفظن ہندِ ورتاوک اکھ مختصر مطالعہ پیش۔ یہ مطالعہ چھہ انہار 2004 غزلک فن شمارس تام محدود۔ اتھ شمارس منز چھہِ 12 ہن ادیبن ہندۍ مضمون شامل تہ اہم کتھ چھیہ یہ زِ امچ کتابت چھیہ اکی کاتبن معراج ترکوی ین کرمژ۔ لہذا یمن لفظن ہنزن املایی شکلن ہنز تفاوت چھہ ہاوان ز یہ فرق چھیہ مقالہ نگارن ہنز۔

12 ہو ادیبو منزہ چھہِ صرف 2 ادیب پننٮن مقالن منز /شاعری ہند/ بدلہ /شاعرییہ ہند/ ہشہِ شکلہ ورتاوان۔ یمن ہندۍ ناو چھہِ رحمن راہی تہ شفیع شوق۔یمن دۅن ادیبن ہندٮن تحریرن منز یہ ہشر آسن چھہ نہ کانہہ تعجب تکیازِ یم چھہِ کاشرس ڈپارٹمنٹس منز یکجا رودۍ متۍ تہ یمو چھہ اکھ اکس پیٹھ سیٹھا اثر تروومت۔ تعجب چھہ زِ شفیع شوق سند برادر ناجی منور چھہ نہ یمن لفظن ہنزِ املایی تہ صرفی شکلہِ متعلق پننس بٲے سنز پیروی کران۔ سہ تہِ چھہ /زندگی ہند/ لیکھان۔ سوال چھہ یہ زِ یمن لفظن ہنزہ /زندگیہ ہند/ ہشہ شکلہ لیکھنہِ کمۍ چھیہ شروع کرِ مژہ؟ راہی ین کنہ شوقن؟ اتھ سوالس ہیکن تمے جواب دتھ، مگر انہار کہ امہ شمارہ تلہ چھیہ اکھ کتھ ننۍ نیران زِ ییتہ راہی پننٮن دۅن مقالن منز یکسان طور تسلسل سان /خود مستیہِ ہند/ ، /ہۅنرمندۍیہ ہند/ ہشہ شکلہ ورتاون چھہ، شوق چھہ پننٮن دۅشونی شامل مضمونن منز اتی یم لفظ اکہ طریقہ لیکھان تہ اتی بییہ طریقہ۔ تسندٮن لیکھن منز چھہ نہ یمن لفظن ہندس املاہس متعلق کانہہ ہشر۔ یمہ کنۍ شک چھہ گژھان زِ یم لفظ ما چھہِ راہی ین نے امہ طریقہ لیکھنۍ شروع کرۍ متۍ۔ مگر یپارۍ چھہ رتن لال شانت تہِ پننٮن لیکھن منز راہی سندۍ پاٹھۍ /زندگیہ ہند/، /خۅد مستیہِ/ ہشہِ شکلہ تسلسل سان لیکھان۔ بہرحال، یمن لفظن ہند یہ املا یمۍ تہِ شروع کوٚر، یہ چھہ محدود تہ میانہ یمہِ تجزیہ مطابق چھیہ /زندگی ہند/ صرفی شکل سانہِ خاطرہ زیادہ صوتی تہ املایی آسایش فراہم کران۔

اتھ املایی شکلہِ پتہ کنہِ چھہ گرامرک یہ اصول زِ تمن لفظن منز چھیہ نہ حالت اضافی تہ حالت فاعلی خاطرہ کانہہ تبدیلی یوان یم زیٹھس /ای/ مصوتس پیٹھ اند واتان چھہِ۔ انشا اللہ دبارہ کرہ بہ کاشرِ زبانۍ ہندس تتھ رجحانس پیٹھ کتھ یُس امہ زبانۍ ہند صوتیات تہ گرامر آسان تہ سادہ بناوان چھہ۔ یہ چھہ سانٮن اچھن برونہہ کنہِ سپدان۔

سند اننچ روایت

یہ ٲس اکھ روایت تمہ زمانچ ییلہ عام انسان پننہِ تقدیرک پانہ مٲلک اوس نہ۔ کیا دینی، کیا علمی، کیا مالی، تمام معاملن منز اوس سماجہ کین کینژن فردن پتہ پتہ پکان۔ یہ اوس محتاج انسان۔ دینی معاملن منز اوس عام انسانہ سند گۅناہ ثواب مذہبی رہنماہن (یمن اسۍ از ملہ ونان چھہِ) مٹہِ تکیازِ عام انسانس نہ ٲس تعلیم تہ نہ سۅد بۅد ۔ ماخذن تام تہ ٲسکھ نہ دسترس۔ کانہہ تہ معاملہ آسہِ ہے کیا چھ ٹھیک کیا غلط تہِ پتاہ کرنہِ ٲسۍ کنی ٹکھ مذہبی رہنماہن نش نوان۔ تمے ٲسکھ وتہ ہاوک بنان۔ یۅہے حال اوس علمک۔ علم تہِ ما اوس عام۔ خواندگی ٲس نہ عام تہ علم کپارۍ آسہِ ہے عام، بییہ ٲس نہ تم ذریعہ تہ یم ازکۍ کس انسانس دستیاب چھہِ۔ صرف ٲسۍ کینہہ شخص آسان یمن عٲلم ناو پیوٚو۔ یمنے نش اوس عام انسان ژاٹہ کوٚٹ کٔرتھ بیہان۔ سیاسی معاملن منز اوس بادشاہ صٲب  یا تسند نایب عام انسانس پیٹھ راجا تاجا کرنہِ بیہان۔ پانے۔ پننی مرضی۔ بادشا اوس خدایہ سند نایب ماننہ یوان۔ مالی حالت ٲس یہ ز کینزنے شخژن نس اوس مال، ملیکت تہ دولت۔ یمے ٲسۍ عام انسانن بیگارِ لاگان۔ یہ اوس اکھ دنیا یس یتھے پاٹھۍ چلان اوس۔ انسانی تمدنک اکھ  مرحلہ۔ اتھ دنیاہس منز ٲس لازما شخص پرستی۔ واریاہن کلچرن منز چھیہ نہ یہ شخص پرستی ونہِ تھپھ تلان۔

ازکۍ کس زمانس منز چھہ پریتھ فرد پننہِ تقدیرک پانہ مٲلک۔ تکیازِ ازچھیہ تعلیم عام، خواندگی تہ ماخذن تام چھیہ عام انسانہ سنز دسترس۔ پرانین ہنز سند اننچ روایت ٲس پرانۍ سے دنیا ہس منز شوبان تہ معنی تھاوان۔ ییلہ تعلیم عام گژھان چھیہ سندِ ہنز جاے چھیہ دلیل رٹان۔ سند اننۍ ٲس پرانہِ دنیاہچ مجبوری، ازچ حقیقت چھیہ دلیل، یتھ استدلال تہِ ونان چھہِ۔ مچھہِ پیٹھ مچھ مارنۍ اوس پرانہِ دنیاہک وطیرہ۔ اتھۍ دنیا ہس منز ٲسۍ لوکھ زبانۍ ہندین معاملن منز، لفظہ کس استعمالس تہ باقی معاملن منز پرانین شاعرن ہنز سند پیش کران تکیازِ تہندۍ شعر ٲسکھ جٹ پٹ یاد آسان۔ کتابہ ما آسہ لوکن نشہِ، ڈکشنری ما آسہ۔ ساروے کھوتہ بٔڈ ریفرنس ٲس لوکن ہندس یاداشتس منز پرانین ہندۍ شعر۔ ہتن نفرن ہنز دلیل ٲس اکس شاعر سنزِ سندِبرونہہ کنہِ لٲر ہش پتھر پیوان۔

اگر پرانۍ تہِ سندے یاژہ ژھانڈان آسہن نویر کپارۍ ییہِ ہے، نوۍ استعمال کپارۍ گژھہن عام۔ تمن ٲس گاہے گاہے پننہ مجبوری منزہ نیرتھ بغاوت کرنۍ پیوان۔

کاشرِ ڈکشنری ہند ریپرنٹ

بوزم اکاڈمی چھیہ کاشرِ ڈکشنری ہند ریپرنٹ چھاپنک فیصلہ کورمت۔ اگر یہ پوز چھہ امہ کھوتہ بڈ ہیکہِ نہ کانہہ بیوقوفی ٲستھ۔ میہ گژھہِ معافی دنۍ بہ چھس ہمیشہ غلط لفظ ورتاوان۔ مگر یہ ڈکشنری چھیہ حقیقتا اکس غلط بنیادس پیٹھ کھڑا کرنہ آمژ۔ اتھ چھیہ نظرثانی کرنچ ضرورت تہ امیک ترتیب چھہ خاص کر درست کرنک ضرورت۔ یم لفظ پیمتۍ چھہ تم ہرراونک چھہ ضرورت، یم غلطی ہا اتھ منز چھیہ تم درست کرنک چھہ ضرورت، لفظن ہندۍ غلط معنی درست کرنک چھہ ضرورت۔ امیک املا چھہ درست کرنک ضرورت تکیازِ یُس املا اتھ منز ورتاونہ آمت چھہ، سہ چھیی نہ وۅنۍ ورتاونہ یوان۔  

dim

امین کامل سندِ اتھہ ڈکشنری ہندس صفحس پیٹھ کینہہ نوٹ۔

ٹینگ صابنۍ رومن فتارتھ

دپان موت چھہ برحق۔ از چھہِ زندہ، پگاہ چھہ مرُن۔ مگر تمیک مطلب ما گوو زِ اسۍ بیہمو ونکہِ پیٹھے قبرِ منز۔ ممکن چھہ عربی رسم الخط تہ باقی تمام خط (چینی، جاپانۍ، کوریایی، روسی بیترِ بیترِ) گژھن دنیا منزہ غیب تہ پتھ کن روزِ صرف رومن خط، تمیک مطلب ما چھہ زِ اتھ دوراندیشی  تحت نمو اسۍ یمن خطن ہنز بیخ زٲلتھ۔ ممکن چھہ  ہتھ، زہ، تریہ ہتھ وری برونہہ کن مرن تمام زبانہ تہ صرف روزِ انگریزی باقی، تمیک مطلب ما گوو زِ اسۍ ژھنوو دور اندیش بٔنتھ ونی پننہ زبانۍ کھش کٔرتھ۔ کورِ بچن چھہ واریو گرہ گژھن آسان مگر یہ ما چھیہ کانہہ دور اندیشی زِ اسۍ ژھنوکھ یم جگر پارہ وقتہ برونہے گرہ مںزہ کڈتھ۔  انگریزی سکرپٹ کیازِ ورتاوو، اسۍ کونہ ورتاوو انگریزی زبانے تیلہِ، قصے مۅکلہِ۔ سۅے گیہ اصل دور اندیشی۔ کاشرِ خاطرہ رومن سکرپٹک تجویز چھہ نہ نوو۔ یہ تجویز آو  50 کین دہلین منز  تہِ برونہہ کن۔  مون زِ ٹینگ سنز دوراندیشی چھیہ صحیح مگر بوزۍ زیس توت تام کٲژا پییہ ین تہ گژھن۔

 Image

ییلہ پنڈت کشرِ نیبر درایہ تمو ورتوو نہ پننین شایع تہ غیر شایع تحریرن منز  عربی خط (حتی کہ شاردا تہِ نہ) بلکہ کورکھ دیوناگری خط استعمال یمیک مطلب یہ چھہ زِ تم چھہ عربی خطس مذہبی/تہذیبی نظرِ وچھان۔ یودوے اتھ کانہہ حرجہ چھہ نہ اگر کانہہ لسانی اقلیت تحفظ کس احساسس تل بدل کانہہ خط ورتاورِ، تاہم چھیہ تمچ حیثیت تمہ اقلیت چہ ضرورژ تامے محدود روزان۔ مگر دیوناگری چھہ کاشرکہ خاطرہ  اکہ متوازی خط کس صورتس منز  ہندوستانس منز پروجیکٹ کرنہ یوان۔ کاشرس چھہ نہ رسم الخطک کانہہ مسلہ بلکہ چھہ یہ سیاسی طور  بناونہ آمت۔ مسلہ چھہ خالص املاہک یتھ کن توجہ دین ضروری چھہ۔ مسلہ چھہ نہ کس اکھ خط ورتاوو بلکہ یس تہِ خط ورتاوو تمچ عملی صورت (یتھ املا وونکھ) یم چلینج تہ مسلہ کھڑا کرِ تمن ہند حل کتھہ پاٹھۍ ییہ کڈنہ۔ رسم الخط تہ املا چھہ زبانۍ ہنزِ خواندگی  سیتۍ تعلق تھاوان، یمن چھہ نہ زبانۍ ہندس بقاہس سیتۍ کانہہ سید سیود رشتہ۔ زبان چھیہ تحریری نظام چہ غیر موجودگی منز تہِ زندہ روزان۔ کاشر زبان چھیہ برونہہ کنچ مثال۔ عربی، دیوناگری یا رومن خط  ورتاونہ سیتۍ گژھہِ نہ کاشر بییہ تمن گرن منز بولن شروع یمو اردوچ گولہ پٲرم شکل اختیار کرمژ چھیہ۔   

 کاشر چھہ تمہ قسمک لسانی سموداے یمن منز ترین زبانن ہند بور وارہ وارہ اکس زبانی ہنز بنیاد کمزور کران چھہ۔ انفرادی طور چھہ انسان دویہ کھوتہ زیادہ زبانہ پانس سیتۍ پکنٲوتھ ہیکان مگر اکھ لسانی کمیونٹی ہیکہِ نہ زیادہ کالس یہ بور تلتھ۔ افسوس چھہ یہ زِ اتھ کشمکشہ منز چھیہ پننی ٹٲٹھ زبان راوان۔ کاشرس چھہ یۅہے مسلہ درپیش۔ اتھ نہ ہیکہ رومن خط بچٲوتھ تہ نہ کلاسیکل زبانۍ ہند درجہ۔

کاشر املا: چلینج تہ امکانات

رسم خطس تہ املاہس درمیان چھہ نہ اکثر  لوکھ بلکہ سانۍ زبان دان تہِ فرق کران۔ رسم خط چھہ زبان لیکھنہ کس نظامس ونان۔ مثلا سون رسم خط چھہ تقریبا سے نظام ورتاوان یُس عربی، فارسی تہ اردو زبانہ ورتاوان چھیہ۔ املا  گوو کُنہِ رسم خطس منز  لفظ لیکھنک دستور، یعنی  اچھرن ہندِ ذریعہ زبانۍ ہندین لفظن ہنز بناوٹ۔  میون یہ مختصر مضمون چھہ نہ رسم خطس[1] بلکہ املاہس متعلق، کاشرس  املاہس متعلق۔

 کاشرس املاہس منز  زمانی سوتھرس پیٹھ ییژہ لگاتار تبدیلیہ تہ انفرادی سطحس پیٹھ بدنظمی ہندس حدس تام یوت تنوع میلان چھہ، سہ چھہ  نہ لیکھہ پرِ لحاظہ معیاری زبانن منز ممکن۔ وجہ چھہ یہ زِ  املاہس چھہ  تعلیمی نظامک مسلسل ورتاو استقامت تہ پایداری بخشان، یُس سانہِ زبانۍ نصیبس اوس نہ۔ ینہ پیٹھہ یہ غلط خیال عام گوٚو زِ لفظ گژھہِ تلفظ مطابق لیکھنہ یُن، دۅن ادیبن ہند املا چھہ نہ پانوانۍ رلان، بحیثیت اکھ ادارہ، اکیڈمی ہنزن اشاعتن منز تہِ چھہ املاہک حدہ کھۅتہ زیادہ انتشار۔ یہ تہِ چھیہ حقیقت زِ سون املا رود تنہ پیٹھہ  واریاہ کینہہ کاتبن ہندس رحم و کرمس پیٹھ۔ مگر  وونۍ چھہ وق زِ اسۍ کرو املاہس پیٹھ نٔوس ماحولس اندر  نوِ سرہ غور۔ امہ نوِ ماحولک ذکر کرہ بہ یتھہ پاٹھۍ۔

Orthography

اکھ وقت اوس خلق ٲسۍ مسودہ لیکھان تہ تمے رژھران تہ بٲگران۔ پرنٹنگ پریسس آو۔ تہ اتھۍ سیتی آو لیتھو پریس تہ کاشرس منز تہِ گیہ زرد مسطرن پیٹھ  کتابت شروع۔ یہ دور رود 1980 تام جاری ییلہ آفسیٹ پریس عام گوو تہ کٲتبو ہیوت کریہنہ میلہِ سیتۍ لیکھن۔ یہ دور تہِ رود داہ پنداہ ؤری، ییلہ زبان لیکھنہ کس سلسلس منز کمپیوٹرک ورتاو عام ہیوتن گژھن۔ ان پیج آو کاشر فانٹ ہیتھ بارسس تہ کٲتبو ہیوت  امیک استعمال کرُن۔ اتھۍ اثناہس منز گوو کمپیوٹر علاوہ انٹرنیٹ عام۔ کتابہ کمپوز کرنس اوس ان پیج بکار یوان مگر انٹرنیٹکۍ  تقاضہ ہیکہ ہن نہ ان پیج سیتۍ پورہ گژھتھ۔[2] ان پیج چھہ بند تلاو۔ انٹرنیٹن کھولۍ کاشرِ زبانۍ ہنزِ خواندگی ہندۍ نوۍ امکانات۔ نہ صرف یہ زِ زیادہ کھوتہ زیادہ لوکن میلہ پننہ فرصتہ تہ استعدادہ موجب  کاشر  پرنک موقع، بلکہ گژھہِ کاشر ادب تہِ عام پاٹھۍ دستیاب۔ امہ علاوہ ہیکن کاشرس منز تہِ ترقی یافتہ زبانن ہندۍ پاٹھۍ مایکروسافٹ ورڈ تہ باقی طرزکۍ  ڈاکیومینٹ بٔنتھ۔ یم اسۍ مختلف پلیٹ فارمن پیٹھ ورتٲوتھ ہیکو۔ یمن امکاناتن کُن گوو مظفر عازم صٲبس ظۅن۔ تمو کرۍ ونیک تام تریہ فانٹ تیار تہ تمن سیتۍ  اکھ مخصوص کیبورڈ تہِ۔ اسۍ ہیکوکھ  یم فانٹ اردو کیبورڈ سیتۍ تہِ ورتٲوتھ۔ یہ مضمون چھس بہ مایکروسافٹ ورڈس منز مظفر عازم صٲبن گلمرگ فانٹ ورتٲوتھ  اردو کیبورڈ کی مدتہ براہ راست ٹایپ کران۔ اتھ نٔوس ماحولس منز کیا چھہِ کاشرِ املاہکۍ  مشکلات تہ امکانات؟

 

املا کہ تعلقہ امکانات

امکاناتن منز چھیہ اکھ بٔڈ کتھ یہ زِ  کاشر پرنکۍ تہ لیکھنکۍ زیادہ کھۅتہ زیادہ موقع سپدن زیادہ کھۅتہ زیادہ لوکن انٹرنیٹ کہ بدولتہ حاصل۔کاشر یوت زیادہ لیکھنہ پرنہ ییہ تیوت ہُرِ املاکہ ہشرک امکان۔ تیوت گژھہ املاچہ معیاربندی کُن زبان ورتاون والٮن ہند توجہ۔ کاشر لیکھُن روزِ نہ صرف کٲتبن تام محدود، یمن مضمون نویسن ہندِ املاچہ خامی درست کرنک ٹھیکہ اوس، بلکہ پریتھ شخص لیکھہ کاشر پننہ اتھہ مایکروسافٹ ورڈس منز، انٹرنیٹس پیٹھ یا باقی ایپلکیشنن منز۔ امکاناتن منز چھیہ یہ کتھ تہِ شامل زِ مختلف پلیٹ فارمن پیٹھ  گژھہِ اسہِ کاشر پرنک عادت۔ یوت یوت اسۍ کاشر پرو تیوت ہُرِ پرنچ روٲنی۔ تہ یتھ خیالس لگہِ پانے پھیش زِ زبان چھیہ ہیجہ کٔرتھ پرنہ یوان۔ میہ ووت وۅنۍ واریاہ کال ونان زِ فونِکس (ہیجہ کٔرتھ لفظ پرنۍ) چھیہ لفظ پرنچ ابتدایی مشق۔ شرۍ چھہِ دویمہِ جمٲژ تامے تمہِ مشقہِ نیبر نیرتھ بصری طور لفظ پران۔ لفظن ہنز ہ صوری شکلہ چھیہ سٲنس ذہنس منز منتقل سپدان یمن ہنز اسۍ تحریر پرنہ وزِ پہچان کران چھہِ[3]۔ امی وجہہ کنۍ ییلہ اسہِ برونہہ کن تیتھ کانہہ لفظ یوان چھہ یُس نہ اسہ امہ برونہہ وچھمت آسہِ، اسۍ چھہِ ہیجہ کرنچ کوشش کران۔ مگر ہیجہ چھیہ نہ ہمیشہ مدد کران، تکیازہ کانہہ تہِ تحریر چھہ نہ فونیٹک۔ تہِ چھہ نہ ممکنے۔ مثلا اسہِ سارنے چھہ انگریزی تگان پرُن، مگر اسہِ برونہہ کن ییلہ rendezvous ہیو لفظ ییہ اگر نہ یہ امہ برونہہ وچھمت آسہِ، اسۍ کیا پرو اتھ؟  لہذا چھیہ امکاناتن منز یہ کتھ  تہِ شامل زِ اسۍ ہیکو کاشرِ زبانۍ ہندس تحریر تہ خواندگی ہندس نٔوس ماحولس منز یہ زبان بصری طور پرنچ استعداد  ہُررٲوتھ۔

 

املا کہ تعلقہ چلینج

موجودہ املاہچ اکھ بارہ کمزوری چھیہ یہ زِ اتھ منز چھیہ نہ لفظس کانہہ معیاری شکل۔ اکے لفظ چھہ نہ صرف دۅیو بلکہ دۅیہ کھۅتہ زیادہ طریقو لیکھنہ یوان۔ پریتھ شخص، تہ پریتھ علاقہ چھہ پننہِ پھورہ مطابق لفظ لیکھان تہ تمچ شکل مقرر کران۔ حالانکہ تحریرک مقصد چھہ نہ یتے یوت زِ اکھ باشہِ زبان ییہِ اچھرن ہندِ ذریعہ ظاہر کرنہ، ہو بہو نمایندگی چھیہ نہ ممکنے، بلکہ چھہ تحریرک  مقصد یہ تہِ زِ زبانۍ اندر تہ زبانۍ ہندین لفظن اندر ییہ اکھ معیار مقرر کرنہ ، یمہِ کنۍ لیکھُن پرُن آسان تہ یکسان اوت نہ بلکہ ممکن تہِ سپدِ۔مگر کاشراملا تجویز کرن والیو بزرگو چھہ نہ امہِ کتھہ ہند خیال تھوومت۔ نہ چھہ تنہ پیٹھہ از تام کٲنسہِ زبان دانن، ادیبن یا ادارن امہِ خاطرہ کانہہ قدم تلمت۔ بلکہ سپز لفظ پننہِ پننہِ طریقہ لیکھنچ نہج عام، یمہِ کنۍ تحریرس منز ونکین معیارہ رنگۍ سیٹھا کھُر نظرِ گژھان چھہ۔

املاہس منز چھہِ نہ مصمتن ہند زیادہ مسلہ۔ یمن ہند مسلہ چھہ زیادہ کھۅتہ زیادہ عربی ، فارسی تہ اردو پیٹھہ آمتٮن لفظن سیتۍ تعلق تھاوان۔ حالانکہ یہ گوٚژھ نہ کانہہ مسلے آسن تکیازِ رسم خط مشترک آسنہ کنۍ ہیکہ املا تہِ مشترک ٲستھ۔ ث، ح، خ، ص، ض، ط، ظ، ع، غ، ف، ق  مصمتہ لفظن منز رژھرٲوتھ تمن ہنز صرفی شکل قٲیم تھاونہ سیتۍ چھہ نہ کانہہ مسلہ درپیش۔ تعلیم، تعبیر، تعویذہ، تعمیر ہوۍ لفظ تٲلیم، تٲبیر، تٲویذہ، تٲمیر لیکھنچ چھیہ نہ کانہہ مجبوری۔خر ہیکون نہ اسۍ کھر، حل ہیکون نہ اسۍ ہل، فٲتر ہیکون نہ اسۍ پھٲتر، کاغذ ہیکون نہ اسۍ کاکذ لیکھتھ۔یمن لفظن ہنزہ  صرفی شکلہ ڈٲلتھ چھہِ اسۍ تتھ خواندگی پھیش دوان یۅس اسہِ اردو زبانۍ کنۍ  گۅڈے حاصل چھیہ۔ عربی، فارسی لفظن ہندۍ مصمتہ ڈٲلتھ (یہ عمل چھیہ پتمین دہن پنداہن ؤرین سیٹھا کم گمژ ) یا یمن ہندۍ مصوتہ بدلٲوتھ نتہ ہُررٲوتھ (یہ عمل چھیہ ونہِ جاری) چھہِ اسۍ یمن لفظن ہنز پہچان مشکل بناوان یمہ کنۍ یمن ہنز پرنچ روٲنی ولٹہ پاٹھۍ متاثر گژھان چھیہ۔ یہ اسہِ اردو کنۍ ویود چھہ تتھ پھیش دیُن چھیہ نہ کانہہ دانٲیی۔امہ علاوہ یوتاہ تحریر اعرابو کنۍ مصروف آسہِ، تیوتاہ ییہ پرنس منز دقت۔

یُس رسم خط اسۍ ورتاوان چھہِ اتھ منز چھہِ نہ ژھوٹۍ مصوتہ لیکھنک رواج۔ یمو زبانو پیٹھہ اسہِ یہ اون تمن منز چھہِ صرف تریہ ژھوٹۍ مصوتہ ۔۔ زبر، زیر تہ پیش۔ مگر کاشرِ زبانۍ ہندین ژھوٚٹین مصوتن ہند تعداد چھہ زیادہ۔ لفظن درمیان امتیازی فرق کرنہ خاطرہ بناوۍ اسہِ یمن ژھوٚٹین مصوتن ہندۍ اعراب مستقل تہ لازمی۔  مزید سپد یہ زِ اتھ رسم خطس منز ٲسۍ زیٹھین مصوتن ہندِ خاطرہ اعرابو بدل اچھر ورتاونہ یوان، مگر اسہ کرۍ زیٹھین مصوتن ہندِ خاطرہ تہِ اعرابے تجویز، یمہ کنۍ اعرابن ہند فہرست سانہ خاطرہ زیٹھیوو۔ تاہم ییلہ اسۍ تحریرن پیٹھ اکھ تنقیدی نظر تراوو، اعرابن ہند 80 فی صد ورتاو چھہ غیر ضروری باسان۔ یمے غیرضروری اعراب چھہِ عام لوکن منز کاشر پرنچ ہمت پھٹراوان،  لفظن ہنز پہچان  تہ پرنچ روٲنی متاثر کران۔ کمپیوٹر کہ استعمالہ کنۍ چھہ یمن اعرابن ہندِ خاطرہ” کی سٹروکن” ہند تعداد یوتاہ ہُران زِ کاشر ٹایپ کرنک سون تجربہ چھہ گراں بار سپدان۔ غیر ضروری اعرابن ہنزہ مثالہ چھیہ پیش۔

اکھ  اقتباس چھہ محمد یوسف ٹینگ صٲبن تحریر،  بیاکھ رحمن راہی صٲبن  تہ بیاکھ کامل صٲبن ۔ اکھ چھہ کنوہشتھ ستتھس دوران لیکھنہ آمت، بیاکھ چھہ کنوہشتھ نمنم تھس دوران، تہ بیاکھ پتمین دۅن ؤرین منز۔ یعنی کاشرِ املاہک یس حال تیلہِ اوس سہ چھہ از تہِ۔

p1

اتھ عبارژ منز چھہِ78 لفظن تلہ تہ پیٹھہ 106 اعراب تراونہ آمتۍ۔ پانے کٔرو اندازہ ، ارستتھ لفظ پرنہ خاطرہ چھیہ اسہِ تمن اعرابن ہنزہ تقریبا ڈۅڈ گنہ رزہ گنڈنہِ پیوان۔ امہ پتہ پنژہہِ وہرۍ لیکھنہ آمتس بنمس اقتباسس منز چھہِ 59 لفظ مگر 79 اعراب چِھکھ پیٹھہ تہ تلہ تراونہ آمتۍ۔

p2

حال حالے لیکھمتس بنمس اقتباسس منز 55 ہن لفظن منز 58 اعراب ورتاونہ آمتۍ۔

p3

 یم ترشوے اقتباس چھہِ اعرابن ہندِ فضول ورتاوچہ مثالہ پیش کران۔گۅڈنکۍ زہ زیادہ تہ ٲخری کم۔ وۅنۍ پریوکھ یم اقتباس کم کھۅتہ کم اعرابو سان۔ 

یمہ برونہہ یم تریہ جلد چھاپ کرنہ آمتۍ چھہِ تمن منز چھہِ الہ پلہ 19200 لفظ تہ تہندۍ معنی بیترِ درج۔ یتھ ژورمس جلدس منز چھہِ "ڑ” اچھرہ پیٹھہ "غ” اچھرس تام 2975 لفظ تہ محاورہ بیترِ سۅمبراونہ آمتۍ تہ یتھہ پاٹھۍ چھہِ ونس تام ڈکشنری ہندین ژۅن جلدن منز تقریبا 26175 لفظ بیترِ تہ تہندۍ معنی درج کرنہ آمتۍ۔ میہ چھیہ وۅمید زِ باقی اچھر یِن وۅنۍ اکس جلدس منزجمع کرنہ تہ شاید ما آسہِ سے کاشرِڈکشنری ہند ٲخری حصہ۔

 اسہِ کرۍ 106 بجایہ صرف کاہ(11) اعراب استعمال تم تہِ امہ مۅکھہ زِ اسہِ چھہ وۅنۍ اعراب لگٲوتھ عبارت پرنک تیوت عادت گومت زِ ساری اعراب یکدم تھود تلنۍ باسہِ عجیبے ہیو۔ نتہ زن چھیہ نہ یمن ہنزتہِ ضرورتھے۔ وچھون وۅنۍ بیاکھ عبارت کم اعرابو سان۔

سۅمبرنہِ منز چھیہ غزلو تہ متفرقہ ژمصراے کیو مفرد شعرو علاوہ ژورِ قسمہ نظمہ شامل: پابند، بے قافیہ، نیم آزاد۔ وزن چھہ مقداری تہِ ورتاونہ آمت تہ غیر مقداری تہِ۔ بیانہ کیوکلہم تہ ضمنی تقاضو مطابق تہ لہجہ چہ کھسہ وسہ کیو رفتارہ موافق چھہ ریوایتی عروضہ نشہ انحراف تہِ سپدمت، تاہم چھیہ نہ کانہہ تہِ نظم خالص نثری۔

یتھ اقتباسس منز آے وۅنۍ 79 بجایہ صرف شیہ (6) اعراب ورتاونہ۔وچھو وۅنۍ تریم اقتباس کم اعرابو سان:

” میہ اوس کالجس منز گۅڈنچہ لٹہِ کلاس روٹمت۔ کتاب ٲسم اتھس کیتھ زِ اتھۍ منز باسیوم کُس تام لڑکہ ژول ژھپھ کٔرتھ کلاسہ منزہ۔ میہ  پرژھ لڑکن یہ کُس ژول۔ اتہِ دیت نہ کٲنسہِ تہِ جواب۔ دویمہ دۅہہ ژول یہ بییہِ رٲسہ پاٹھۍ۔ ژھاے گراے وچھمس تہ زونُم یہ چھہ شیخ صٲبن لڑکہ فاروق عبداللہ۔” 

یتھ اقتباسس منز ورتٲو اسہِ 58 ہو بجایہ صرف (18) اعراب۔ ترشونی اقتباسن منز وچھوہ تۅہہ زِاعرابن ہند استعمال کوتاہ فضول چھہ، خاص کر یمن ہوین لفظن منز: لفظ (لَفٕظ)، منز (مَنٛز)،درج (دَرٕج)، ڈکشنری (ڈِکشَنٔری) ، جمع (جَمع)، غزلو (غَزلَو)، متفرقہ (مُتفِرقہٕ)، وزن (وَزَن)، انحراف (اِنحراف)، سپدمت (سَپُدمُت)، لڑکن (لٔڑکن)،  بیترِ۔لفظ اعرابو روٚس لیکھنچ حکمت چھیہ ننۍ۔ اکھ یہ زِاعرابن ہندۍ کنڈۍ چھہِ نہ اچھن سنان تہ نظر چھیہ نہ اعرابن ہندس گاسلاتس منز راوان۔سطرن درمیان یس جاے پرنچہ آسانی خاطرہ تراونہ یوان چھٮہ، سۅ چھیہ نہ پیٹھمہ لٲنہِ ہندیو بنمیو تہ بنمہ لٲنہِ ہندیو پیٹھمیو اعرابو ستۍ برنہ یوان۔ ترٮن پیراگرافن منز انۍ میہ 208 اعراب بچت۔ یم گیہ 208 "کی سٹروکن” ہنز بچت۔ وقت تہِ  لگہِ کم، جہد تہِ لگہِ کم۔

کم کھۅتہ کم تہ خالص ضروری اعراب ورتٲوتھ تحریر لیکھنک تجربہ کور میہ کاشر اخبار انٹرنیٹ سایٹہِ تہ نیب رسالس منز۔ یم دۅشوے تجربہ رودۍ کامیاب۔ کاشر اخبارکۍ پرن والۍ ٲسۍ نہ ادیب بلکہ عام لوکھ یمن نہ کاشر پرنک کانہہ تجربہ اوس۔ سایٹہِ پیٹھ موجود سروے مطابق ٲس نہ یمن عام لوکن اعراب ورٲے تحریر پرنس منز کانہہ دقت یوان۔ یہند ردعمل اوس زیادہ اہم تکیازِ یمن اوس نہ سانین ادیبن ہندۍ پاٹھۍ اعرابی تحریرس عادت گومت۔ میانیو یمو تجربو تلہ چھیہ یہ کتھ صاف زِ کم اعراب وول تحریر پرنس چھیہ نہ عملی طور کانہہ دقت پیش یوان، بس چھہِ نام نہاد علمی اعتراض کرنہ یوان۔

پیٹھمہ بحثہ تل چھیہ کتھ صاف زِ سانہِ املاہک اکھ زبردست چلینج چھہ امہ منزہ غیرضروری اعراب کم کرنۍ تاکہ کمپیوٹر تہ انٹرنیٹ کین امکاناتن ہندِ خاطرہ بنہِ نہ یہ حوصلہ شکن ٹھور۔ بہ چھس اعراب کم کرنہ کس سلسلس منز تمن سفارشاتن پیٹھ غور کرنچ دعوت دوان یمو سیتۍ نیبک پریتھ شمارہ عبارت چھہ تہ یمہ مضمونک املا تہ اکھ مثال پیش کران چھہ


[1] کاشرس منز چھہ نہ رسم خطک کانہہ مسلہ۔ علاوہ رسم خطن ہند مسلہ چھہ دراصل کشیرِ نیبرِمٮن کاشرٮن ہند ۔ مگر اتھ چھیہ ہنگہ تہ منگہ کشیرِ سیتۍ واٹھ دنچ کوشش کرنہ یوان۔ ہندی رسم خطچ سفارش چھہِ خاص کرسانۍ پنڈت بٲے کران یم کشیرِ نٮبر ہندوستانس منز چھہِ۔ رومن رسم خطچ سفارش چھہِ اکثرتم حضرات کران یم ہندوستانہ نٮبر انگلستان، امریکہ بیترِ جاین چھہِ۔کشیرِ نٮبر روزِتھ چھیہ کاشرٮن ہنز دوٚیم پے اردو فارسی رسم خط نش اتھہ چھلان یمیک بوٚڈ وجہ یمن جاین ہند تعلیمی نظام چھہ۔ ہندوستانس منز چھہ سکولن منز ہندی تہ امیک رسم خط پرناونہ یوان تہ یتھے پاٹھۍ انگلستان تہ امریکہس منز رومن رسم خط۔ لہذا چھیہ کاشرٮن ہنز دوٚیم پے تمہِ نش تہِ اتھ چھلان یہ تنہدس مٲلس ماجہ اردو لیکھن پرُن زاننہ کنۍکاشرس نسبت تگان اوس۔ کاشرِ زبانۍ ہند بول چال چھہ البتہ پننہ پننہ رنگہ قایم روزان، مگرسہ تہِ اکس حدس تامے یعنی بنیادی طورپننس مٲلس ماجہ علاوہ پیترن، پۅپھن، ماسن، مامن ستۍ کتھ باتھہِ ہندس حدس تام۔ مگر حقیقت چھیہ یہ زِ تریمہِ پیہ تام چھیہ زبان تہِ ختم آسان گمژ یس زن تمن حالاتن منز قدرتی تہ لازمی چھہ۔ علاوہ رسم خطن ہنز سفارش چھیہ دراصل نٮبرمٮن کاشرٮن ہنز کاشرس نکھہ روزنچ تہ زبانۍ ہند سلسلہ پننٮن بچن منز جاری تھاونچ کوشش۔مگر حقیقت چھیہ یہ زِیم ساریۍ کوششہ چھیہ بٮہ کار۔ یم چھیہ نہ آبہ نٮبر درامژِ گاڈِ ہنزِ ڑھرٹہِ علاوہ بییہ کینہہ۔ یہ مسلہ کشیرِ تام واتناون تہ اتھ کشیرِ اندرمٮن ادارن ہنز سرپرستی ہند مطالبہ کرن چھہ مضحکہ خیز۔کشیرِمنز چھہ نہ رسم خطک کانہہ مسلہ، تکیازِیُس رسم خط اسۍ کشیرِ منز ورتاوان چھہِ ،سہ چھہ تتہِ سارنے ویوٚد۔ البتہ چھہ تتہِ املاہک مسلہ یُس توٚت تام جاری روزِ یوٚت تام نہ زبان عام لیکھہ پرِ منز ییہ۔

[2] بہ اوسس 2005 دوران انٹرنیٹس پیٹھ  کاشر اخبار ناوہ اکھ اخبار تقریبا روزانہ شوقیہ کڈان۔  یمیک کینہہ آرکاییو انٹرنیٹس پیٹھ ونہِ موجود چھہ۔ کاشراخبار ڈاٹ کام۔ اخبارن منز چھیہ زیادہ سیاست آسان یۅس میہ سخ کھران چھیہ، مگر مقصداوس کاشِر خواندگی عام کرنۍ۔ اتھ اخبارس ٲسۍ  فی ہفتہ  زہ تریہ ہتھ لوکھ ہِٹ کران تہ شاید پران تہِ۔ مگر مسلہ اوس یہ زِ گۅڈہ آسہ خبرہ ان پیجس منز کمپوز کرنہِ پیوان، تمہ پتہ تم ای پی ایس امیجن منز تبدیل کرنہِ پیوان تہ تمہ پتہ سایٹہِ پیٹھ اپلوڈ کرنہِ پیوان۔ اکھ زیٹھ ہۅدہ ہر۔ امیک حل کوڈ مظفر عازم صٲبن ییلہ میہ تمن سیتۍ رابطہ سپد تہ یہ معلوم سپد زِ تم چھہِ کاشرس فانٹس پیٹھ کٲم کران یُس اسۍ  مایکروسافٹ ورڈ علاوہ انٹر نیٹس پیٹھ تہِ ورتٲوتھ ہیکون۔ نیب رسالچ ویب سایٹ چھیہ عازم صٲبنس فانٹس منز دستیاب۔ اتھ ویب سایٹہ پیٹھ یم تہ نکارشات چھہِ تمن ہند پریتھ لفظ چھہ سرچیبل تہ کانہہ تہ حصہ ہیکہِ کاپی کٔرتھ کنہِ تہِ پلیٹ فارمس پیٹھ ورتاونہ یِتھ۔

 [3]  It’s improtant thet we uderstand how we read. اگر توہہِ یہ جملہ ترین لفظن منز غلط ہیجہ آسنہ باوجود پرُن توٚگ، کتھ چھیہ صاف زِ اسۍ چھہ لفظن ہنزہ کلہم شکلہ عادتا پران، تمن ہند پھور نہ۔ اگر اسہ انگریزی زبان یتھہ پاٹھۍ پرنۍ تگہِ ، کاشر کیازِ تگہ نہ۔ کاشر چھیہ اسہِ پننۍ زبان۔ یمن حضراتن یہ خدشہ چھہ زِ اگر لفظ پھورہ مطابق لیکھنہ ییہ نہ، سہ پرُن چھہ مشکل، تمن پزِ اتھ متعلق دوبارہ سوچُن۔ حقیقت چھیہ یہ زِ لفظ اگرچہ اچھرن ہندۍ مرکب چھہِ مگر یوت تام پرنک تعلق چھہ،  لفظ چھہِ بصری صرژن ہندس صورتس منز پرنہ یوان۔

 

 

وۅپر کیا تہ پنن کیا

 "اکھتے ما ین پتمس ہتس ڈۅڈس ہتس ؤریس منز کاشرس شعرہ
نطقس اگادِ گمژہ واریاہ زبجورِ تہِ مژراونہ۔” 
 –محمد یوسف ٹینگ

"تام رٹہِ تمن عروضہ پاسدارن پتھ یم کاشرِ شاعری زیر کروُن وۅپر
عروضی گہنہ لاگن چھہِ یژھان۔”
–شفیع شوق

 

نیب کس  شمارہ 24 ہس منز وون میہ زِ وزن چھہ شعری ہیژ ہند اکھ حصہ یمہِ کنۍ یہ مثلا غزلہ کہ خاطرہ ضروری بنان چھہ۔ مگر آزاد نظم یا نثری نظمہِ ہندِ تعلقہ یۅس روایتی ہیت مسمار کرنہ خاطرہ وجودس منز آیہ چھہ نہ وزن ضروری حالانکہ اگر ورتاونہ تہِ آو غیر مستحسن تہِ چھہ نہ۔ گویا شاعر ورتاویا وزن کنہ نہ، تمیک دارہ مدارہ چھہ شاعرس پیٹھ۔ شاعر کُس وزنہ نظام ورتاوِ تہ کُس نظام چھہ کُنہِ زبانۍ ہندِ خاطرہ مناسب تہ موافق تہ موزون تہ لگہار، تمیک دارہ مدارہ تہِ چھہ شاعرسے پیٹھ۔ اگر لل دیدِ تہ شیخ العالمن کانہہ خاص نظام ورتوو، تمن باسیوو سے مناسب، موافق تہ لگہار تہ شاید اوسکھ تی برونہہ کنہِ، تہ اگر محمود گامی تہ رسول میرن کانہہ بیاکھ وزنہ نظام تہِ ورتوو تمن باسیوو سہ نظام تہِ موافق تہ لگہار۔

poet

لل دیدِ تہ شیخ العالمن کوتاہ انصاف کور تتھ وزنہ نظامس سیتۍ یُس تمو پننہِ شاعری منز ورتوو، تہِ زاننہ خاطرہ چھہ گۅڈہ سہ نظام سمجن ضروری۔ تمہِ نظامک چھہ نہ ثیقہ پاٹھۍ کٲنسہِ علم، لہذا چھہ اسہِ باسان زِ تہنزِ شاعری ہنز موزونیت چھیہ بے داغ۔ البتہ چھہِ اسۍ تمہِ وزنہ نظام چہ (یعنی فارسی عروض چہ) زانۍ کنۍ محمود گامی تہ رسول میر سندس ورتاوس کٹھہ کڈان یُس تمو پننہ شاعری ہندس اکس اہم حصس منز ورتوو۔ حقیقت چھیہ یہ زِ یم دۅشوے وزنہ نظام چھہِ کَنہ کہ لحاظہ کاشرِکہ خاطرہ ہوی موزون باسان۔ یہ چھہ بیاکھ سوال زِ یمن وزنہ نظامن ہند کُس کُس وزن (یا لے) چھہ کاشرس براہ۔ ممکن چھہ کانہہ وزن(لے) ما ہیکہِ نہ آسان، موافق تہ لگہار ٲستھ، یا موضوع، مقصد تہ لہجہ کہ لحاظہ ما ہیکہِ اکھ وزن (لے) زیادہ مناسب تہ لگہار ٲستھ۔ مثلا یوت تام لل دیدِ تہ شیخ العالم سندِ وزنہ نظامک تعلق چھہ، تمو چھہ تمام شاعری منز صرف اکوے آہنگ ورتوومت یس زن واریاہ حدس تام محدود تہ یک سطحی چھہ۔ شاید اوس یہنزِ شاعری ہنزِ نوعیژ کنۍ یی مناسب۔ لہذا چھہ نہ یہنزِ شاعری منز آہنگک سہ تنوع یُس حبہ خوتونہِ، صوفی شاعرن یا محمود گامی تہ رسول میر سنزِ شاعری منز میلان چھہ۔

اسۍ چھہِ نہ یہ تہِ ؤنتھ ہیکان زِ لل دیدِ تہ شیخ العالم سند وزنہ نظام تہ حبہ خوتونہ ہند وزنہ نظام چھا اکوے کِنہ الگ الگ۔ اکوے وزنہ نظام یُس اسۍ آسانی سان پہچٲنتھ ہیکان چھہِ سہ گوو فارسی وزنہ نظام ۔ امہ الگ یہ کینژھا چھہ تتھ چھہِ اسۍ کُنہِ حجتہ ورٲے پانے کاشر وزنہ نظام ونان۔ اگر اسۍ تجزیاتی نظرِ اتھ وزنہ نظامس وون دمو اسۍ وچھو زِ فارسی وزنہ نظامہ برونہہ چھہ سانہِ تمام تر شاعری منز ہیجلۍ نظام ورتاونہ آمت۔ اتھ ونوا اسۍ کاشر وزنہ نظام کِنہ بیاکھ اکھ وزنہ نظام یُس دنیا چین باقی زبانن منز تہِ رایج چھہ تہ کاشرِ زبانۍ تہ براہ اوس؟  

اسۍ چھہِ یژھے حجتہ زبانۍ متعلق تہِ قایم کران۔ اگر پرون چھہ، سہ گوو پنن تہ اگر نوو چھہ سہ گوو وۅپر۔ سنسکرتی کاشر (مثلا لل دیدِ ہندۍ واکھ) گوو  پنن کاشر تہ فارسی آمیز کاشر (مثلا رسول میرنۍ غزل) گوو وۅپر۔  یتھے پاٹھۍ چھہ ازکل اسۍ  تتھ زبانۍ کاشرچ آلودہ شکل تصور کران یۅس اردو آمیز چھیہ۔

سۅے چھیہ زندہ زبان تہ زندہ ادبی روایت یتھ منز  اثرات پانس منز جذب کرنچ صلاحیت آسہِ۔ یہ تبدیلی چھیہ نہ کانسہِ نفرہ یا جمٲژ ہندِ طرفہ کنہِ منصوبس تحت سپدان بلکہ چھیہ یہ اجتماعی سطحس پیٹھ وارہ وارہ شکل رٹان۔

وقتچ ضرورت: نسخ خط

اسہِ پزِ  کاشرِ خاطرہ نستعلیق ترٲوتھ وۅنۍ نسخ خط ورتاون۔

نستعلیق یمو ایجاد کریوو تمو تہِ کور یہ سیٹھا سلہِ پننہِ عمومی لیکھہ پرِ منز ترک۔ یہ چھہ ایرانس منز  وۅنۍ صرف فن خوش خطاطی (آرٹ) خاطرہ استعمال کرنہ یوان، لیکھنس پرنس خاطرہ چھہ صرف نسخ۔

ایرانس منز چھہ نستعلیق صرف کینژن کتابن ہندین سرورقن، تنظیمن تہ ادارن ہندین سائین بورڈن ہندِ خاطرہ۔ امہ علاوہ شاذونادر گرانقدر کتابن مثلا دیوان حاقظ کین مخصوص ایڈیشنن ہندِ خاطرہ۔ بس! نستعلیق چھہ نہ عام استعمالس منز بالکل ورتاونہ یوان۔ ایرانس منز گژھہِ نہ توہہ نستعلیق کنہ اخبارس، میگزینس، کنہ عام ورتاوچہ کتابہ منز نظرِ۔ حتی کہ ایرانین ہند خط (handwriting) تہ چھہ نسخ۔

میہ چھیہ پتاہ یس چیز وانسہ ورتوومت آسہ تمہ کہ راونکھ دۅکھ چھہ گژھان۔ انسان دپان کہنی گوژھ نہ راون۔ سورے گوژھ ییتی روزن مگر وقتس برونہہ کنہ چھہ ساری مجبور۔ نستعلیق گژھہ نہ یکدم ختم، وارہ وارہ۔ گۅڈہ نیرن میہ ہوۍ "سرپھرے” یم نسخس منز کتابہ چھپاون۔ لوکھ تلن شور۔ اڈۍ دپن سٲنس کلچرس خلاف چھیہ سٲزش، اڈۍ دپن اسلام خطرے میں ہے، بٹہ بٲے ونن وچھ سا موکلووکھ نستعلیق تہِ۔ اونکھ عربی خط۔ بیترِ بیترِ۔

qashaq
حقیقت چھیہ یہ زِ کمپیوٹر تہ انٹرنیٹ کہ خاطرہ چھہ نسخ خط زیادہ موافق۔ یہ خط چھہ سیود، اکۍ سے سطرِ منز پکن وول، ورتاوہ کنۍ آسان، کفایتی تہ عالمگیر۔  اتھ منز چھہ ٹایپو گرافی ہند زبردست تنوع دستیاب تہ ممکن۔

خطاطی ہند زمانہ موکلیوو تہ تتھۍ سیتۍ مۅکلیوو  نستعلیق خط تہِ۔ وۅنۍ چھہِ اتھ اردو والۍ نتہ کاشرۍ لٲرۍ۔ بہ چھس یمہ کتھہِ ہند قایل زِ تبدیلی چھیہ ترقی ہنز ہیر۔

گنتی ہندۍ کینہہ کاتب ترٲوتھ، ٲسۍ نہ کشیرِ منز نستعلیقکۍ خوش خط کاتب تہِ دستیاب۔ پیٹھہ ییلہ کاشرس املاہس کُن یمو امہِ خطچ خوبصورتی چھیہ اعرابو یہ دپۍزِ تہِ زٔلتھ نمژ۔ نستعلیقس منز چھہ ان پیجس منز تھیکنۍ لایق زہ خط مگر ان پیج چھہ بند تلاو۔ عازم صٲبن بنوو محدودے سہی گلمرگ ناو کٔرتھ اکھ اوپن سورس نستعلیق خط ترمیم کٔرتھ کاسرش لایق یس میہ نیب کین پتمین ترین شمارن منز ورتوو۔ مگر اتۍ نے چھہ نہ بند گژھن۔ تتھ وتہِ پکنہ سیتۍ کیا نیرِ یۅس بتھہِ بند آسہِ۔

1950 دوران ییلہ سانۍ بزرگ نیتھہ ننہ زبانۍ اچھرہ ورُن کرنہِ لگۍ، اکھ تجویز ٲس نسخ۔ تجویز کرن والین ہنز دور اندیشی! مگر تمچ سپز تمہ ساتہ مخالفت۔ ونۍ کین چھہِ اسۍ مجبوری کنۍ فیس بکس پیٹھ نسخ حطے ورتاوان۔ میہ ووت 27 شمارہ پیٹھہ نیبس منز گۅڈنکۍ شیہ ستھ صفحہ نسخس منز دوان۔ اڈیو کٔر شکایت، اڈیو کٔر ژھوپہ۔ شمارہ 31 آسہِ اکھ قدم برونہہ۔ وچھو کیا روزِ ردعمل!

نوٹ: یمن دوستن نستعلیق تہ نسخ خطن ہنز فرق معلوم چھیہ نہ،  تہندِ خاطرہ چھہ عرض زِ یہ بلاگ چھہ نسخ خطس منز۔  ممکن چھہ پرنس ما آسہِ دقت یوان مگر صرف امہ مۅکھہ زِ تۅہہ چھہ نستعلیقس عادت۔ یہ بلاگ روزِو پران۔ تہند سوچ تہِ روزِ بدلان!