نیول رنگ

بیاکھ چیز لۆب۔ اکہ وقتہ اوسس بہ ہندی شاعری تہِ کران۔ تۅہہ چھیہ پتاہ ہندی شاعری چھہ الگے انداز۔ کینہہ نظمہ آیہ کاغذ ژھانڈان ژھانڈان اتھہ۔ اکھ نظما کرون ییتہ نس درج۔

नीला रंग

 

मेरी आँखें

तारों के झुरमुट में

खो जती हैं

तारों के पीछे गहरे

अनदेखे सोच में

डूब चली जाती हैं

इतने में

तारों का झुरमुट

आंखों में डूबके

खो जाता है

आसमान में

बस नीला रंग

रह जाता है

(ترجمہ:

نیول رنگ

میانہِ اچھن چھیہ
تارکن ہندس جھرمٹس منز
راوان

تارکن پتہ کنہِ
سرنس اوچھ سوچس منز چھیہ
ڈوبان روزان)

اتی چھہ
تارکن ہند جھرمٹ اچھن منز
ڈوبتھ راوان

آسمانس منز چھہ
صرف نیول رنگ
روزان

پانژھ رستم، پانژھ دریاو

نوٹ: از لٔب میہ اکس کاغذس پتہ کنہِ اکھ نظم۔ بہ اوسس ژھانڈان میہ ما آسہِ علامتس متعلق کانہہ مضمون کنُہِ ساتہ رژھروومت۔ یہ چھیم نہ پتاہ یہ کر میہ لیچھمژ۔ چونکہ یہ چھیہ پنسل سیتۍ میانی اتھ لیکھتھ، لہذا آسہ میٲنی نظم۔ دچھنہ طرفہ چھس لیکھتھ: کامل، نادم، راہی، اختر، لون۔ یہ چھم نہ پتاہ نظمہِ ہندۍ بند چھا امی ترتیبہ لیکھنہ آمتۍ کنہ نہ۔ میہ چھہ نہ یادے۔ بییس جایہ چھہِ نظمہ ہندۍ گۅڈنکۍ تریہ بند لیکھتھ نثرکۍ پاٹھی یکجا، سیتی چھس حاشیس منز راہی، کامل، نادم لیکھتھ۔ بہرحال میہ دۆپ کھالون بلاگس۔ یژھہ چھیہ خبر کٲژا نظمہ تہ غزلہ راو‏مژہ۔ میہ اوس نہ زنہے پننۍ چیز رژھراونس یا شایع کرناونس سیتۍ دلچسپی۔ نظم پٔرتھ ترِ تۅہہ فکرِ کیازِ نہ۔ فٲترگیا ہۅ تہِ تہ فٲترگیا یہ تہِ۔

کٲنسہِ ما تگہِ  پانژن رستمن سیتۍ نظمہِ ہندۍ بند رلاونۍ؟

پانژھ رستم، پانژھ دریاو

اکھ رستم
پننس دریاوس
پشجین ملرین رکنہِ وسان

بیاکھ خبر کیا لاس لٔبتھ
ڈنگ دتھ بیوٹھ
حبابس منز

بیاکھ چھہ وۅگنین جاین وٲتتھ
کرنجلیو کرنجلیو
ساراں آب

بییس چھہ پۆس کھۆتمت
واوہ طفانس
آب مندان

بیاکھ چھہ پننس دریاوس
پننی گتھہِ منز
ییرہ گۆمت

ساہتیہ اکاڈمی ہنز انتھالوجی "ہم کال کاشر شاعری”

12596426_10153637724419833_1232161089_n

انتھالوجسٹ ڈاکٹر عزیز حاجنی

[یم کینہہ لفظ لیکھنہ برونہہ کرہ بہ واضح زِ یہ انتھالوجی بناون وٲلس ادیبس سیتۍ چھیہ نہ میہ کانہہ ذاتی رش، کانہہ لین دین یمہ سیتۍ تنازعہ وۅتھہِ، کُنہِ مہربانی ہنز کانہہ توقع یمہِ کنۍ ناراضگی گژھہِ، بلکہ چھس بہ تمۍ سند مداح، یمہ ساعتہ تم سیکریٹری بنییہ بہ گوس سیٹھا خۅش یمیک اظہار میہ فیس بکس پیٹھ تہِ کو٘ر۔ مداح تہ خۅش امہِ مۅکھہ تکیازِ یہ میہ چھہ امۍ سندۍ واریاہ چیز پرۍ متۍ یمو سیتۍ اکس پرۍ متس لیکھمتس انسان سند تصور وۅتلان چھہ۔ ]

مگر یہ انتھالوجی وچھتھ چھہِ کینہہ سوال ذہنس منز ضرور وۅتلان یمن ہند جواب ژھارُن فطری کتھ چھیہ۔ گۅڈنچ کتھ چھیہ یہ زِ میہ چھہ نہ باسان ساہتیہ اکاڈمی، یہندِ خاطرہ انتھالوجی بناونہ چھیہ آمژ ، چھہ انتخاب کرن وٲلس کُنہِ قسمکۍ رہنما اصول دتۍ متۍ نتیجہ چھہ یہ زِ انتھالوجی ہند اکھ اہم اصول چھہ نظرانداز کرنہ آمت۔

انتھاوجی چھیہ نہ تواریخ تہ نہ چھہ یہ کانہہ ادبی جایزہ۔ یہ چھیہ نہ تژھ کانہہ دستاویز یتھ منز اکس ادیب سنز مثال دتھ بیاکھ مشراونہ آسہِ آمت۔ اتھ انتھالوجی یس مضمون پننۍ کتھ کہ ناوہ نتھۍ کرنہ آمت چھہ سہ شوبہِ نہ کنہِ صورتس منز ۔ انتھالوجی ہندِ خاطرہ یس چیز امہ بدلہ ضروری چھہ، سہ چھہ نہ کنی۔ یعنی انتخاب کتھہ پاٹھۍ چھہ کرنہ آمت تہ یم چیز منتخب کرنہ آمتۍ چھہ تم کیازِ چھہِ منتخب کرنہ آمتۍ۔ پرن وول گژھہِ نہ کنہِ تہ صورتس منز کانسہِ اکس ادیب سندس حقس منز متاثر گژھن، امہ کنۍ چھہ واریاہو نقادو فن پارن انتخاب کرن والۍ سندِ طرفہ نوٹ لیکھنس تہِ ٹھاک کو٘رمت۔

سوال چھہ یہ اگر اتھ پننۍ کتھہِ منز راہی تہ نادم سند ناو ہینہ آمت چھہ،نسیم شفایی تہ محمد احسن احسن، غلام رسول جوش بیترِ سند ناو تہ شعرہ مثالہ دنہ آمژہ چھیہ، کامل کیازِ چھہ مشراونہ آمت؟ یمے مسلہ مد نظر چھہِ نہ انتھالوجی منز امہ قسمکۍ پیش لفظ لیکھنہ یوان؟ غزلچ کتھ چھیہ تلنہ آمژ مگر کامل سند ناو چھہ نہ ہینہ آمت۔ اتھ سونچتھ سمجتھ مشرفس متعلق کیا ہش صفایی دیہِ یہ مضمون نویس؟ کامل سنز اہمیت آیہ اتھ انتھالوجی منز گۅڈے ختم کرنہ۔ غزلہ کہ تعلقہ چھہ نہ رفیق راز سند ناو تہِ کنُہِ۔

امہ پتہ یمو انتخابس کن۔ کنہِ فن پارس متعلق چھہ نہ وننہ آمت زِ سہ کیازِ چھہ شامل کرنہ آمت۔ کیا کامل سند اہم شعری کارنامہ تہ نمایندہ فن پارہ چھا "تٲے نامہ”؟ کیازِ تہ کتھہ پاٹھۍ؟ میہ چھہ نہ باسان انتھلوجسٹ چھہ کامل سندِ شعری سرمایہ نش یوت نابلد۔اگر کامل سند نمایندہ فن پارہ "تٲے نامہ” چھہ تیلہ گژھہِ راہی سند نمایندہ فن پارہ "ونہ وُن” آسن۔

سوال چھہ یہ تہِ وۅتھان زِ کینہہ شاعر کیازِ چھہ مشراونہ آمتۍ تہ کینہہ کیازِ چھہ شامل کرنہ آمتۍ؟ انسان چھہ سوچان زِ علی محمد شہباز، شمبو ناتھ بٹ حلیم، محمد یوسف مشہور، بشیر عارف، بشیر بشر، محفوظہ جان ہوۍ شاعر کتھ جوازس تحت چھہِ شامل کرنہ آمتۍ؟ اگر یم شامل گژھنس لایق چھہِ کیا قاضی غلام محمد، سجود سیلانی، غلام احمد گاش، فرحت گیلانی، موتی لال ناز، موہن نراش، مکھن لال کنول،گلشن مجید، اقبال فہیم، غلام محمد آجر، محمد امین شکیب،فیاض دلبر، محمد رمضان ہوۍ شاعر کیازِ آیہ نہ شامل کرنہ؟ کیا یم چھنا انتھالوجی لایق؟ کیازِ نہ؟

جاے کم آسنک عذر چھہ نہ کانہہ معنی تھاوان۔ اگر واقعی جاے مینتھ ٲس تیلہ گوٚژھ نہ اتھ منز عزیز حاجنی آسن،بلکہ قاضی غلام محمد۔

یہ انتھالوجی چھیہ اہم کتاب یۅس 24 ہن ہندوستانۍ زبانن منز ترجمہ گژھہِ۔ یم سوال چھہ جوابکۍ طلب گار۔ یمن سوالن ہند جواب چھہ نہ اتھ انتھالوجی منز کنہِ جایہ میلان۔

مشروع نصیب آبادی سنزہ نظمہ

mashru

میہ چھیہ خوشی بہ چھس مشروع نصیب آبادی سنزہ تریہ نظمہ بلاگ کین پرن والین بطور اکھ تحفہ پیش کران۔ مشروع چھہ تصوف کنۍ زاننہ یوان تہ اکثر پابند شاعری کران۔ نظمہِ کن توجہ چھیہ اکھ خۅشگوار تبدیلی۔ یمن نظمن ہندِ تعلقہ چھیہ کینہہ کتھہ ضروری یم میانہِ خاطرہ، شاعر سندِ خاطرہ تہ پرن والین ہندِ خاطرہ شاید وتھ گاشراون۔

وننہ چھہ یوان زِ شاعری چھیہ خوبصورت زبانۍ ہند ورتاو۔ یہ ہن چھہ پو٘ز۔ امہ خوبصورتی ہند گۅڈنیک قدم یا ونیوس شرط چھہ یہ زِ زبانۍ منز گژھہِ صفایی آسنۍ۔ مثلا اگر کنہِ کمرس اندر خوبصورتی ہند کوتاہ تہِ سامانہ آسہِ مگر صفایی آسیس نہ، سۅ خوبصورتی چھیہ راوان۔ زبانۍ ہنز صفایی چھیہ خیالس تہ زبانۍ ہندِ مطابقتک ناو تہ امہ مطابقت سیتۍ یُس زبانۍ منز ارتکاز یوان چھہ، تمیک ناو۔ مشروع سنزن نظمن منز چھیہ یہ صفایی درینٹھۍ یوان۔

مگر صفایی یوت کرِ نہ کینہہ۔ زبانۍ ہند خوبصورت ورتاو تہِ گژھہِ آسن۔ سہ گو٘و یہ اگر کمرس منز سیٹھا صفایی آسہِ مگر خوبصورتی ہند آسیس نہ کانہہ سامان منز، ‎سۅ صفایی ہیکہِ نہ دلس تہ دماغس آورٲوتھ۔ خوبصورتی ہند سامان چھہِ پیکر ۔ پیکرن ہندۍ چھہِ قسم۔ زیادہ عام پیکر چھہ تم یم اچھن یعنی وچھنس سیتۍ تعلق تھاوان چھہِ۔ جدید دورس منز آو اتھ پیکرس پیٹھ زیادہ زور دنہ۔ وجہ یہ زِ جدید تصور مطابق چھہ شاعر وننہ بجایہ ہاوان۔ تم پیکر یمن آوازِ سیتۍ، یا مزہ یا مشکس یا لمس کین حیسن سیتۍ تعلق آسہِ، تم ورتاونۍ چھہ نہ آسان۔ پیکرن ہند اکھ قسم چھہ ذہنی یا تصوری پیکر۔ مشروع سنزن نظمن منز چھہِ یم پیکر تہِ درینٹھۍ یوان۔ یوت یوت یم پیکر نوِرہ سان ورتاونہ ین، تیوت تیوت ہرِ یمن ہند مۅل۔

صفایی تہ خوبصورتی پتہ چھہ لازما انسان سند "ذہن” فکرِ ہند عنصر ژھاران یعنی کنہِ تہِ خوبصورت منظرس منز سرینیر ونہِ کڈنچ کوشش کران۔ اتھۍ فکرِ تہ سرینیرس چھہِ اسۍ معنی یکۍ تہہ یعنی سطحہ ونان۔ یہ فکر چھیہ تتھیو ولو سیتۍ پیدہ گژھان یمن منز کنایہ (یعنی حوالہ یا اشارہ یا رمز) تہ استعارہ تہ علامت تہ یتھی باقی چیز یوان چھہِ۔ یمو ولو سیتۍ چھہ شعر وضاحت کہ عیبہ نش بچان۔ زبانۍ ہندس یتھس ورتاون کن تہِ چھہ مشروع سند توجہ ہیو٘تمت گژھن۔

یمن چیزن ہند آسن چھہ سیٹھا مگر اکھ کامیاب تہ روزن وول شاعر چھہ پننس اکس شعرس یا نظمہِ منز (یتھے پاٹھۍ افسانس منز) یا پننہِ کلہم شاعری منز اکھ تخیلاتی دنیا آباد کران۔ پرن وول تہِ چھہ پران پران اتھ دنیاہس منز قدم تراوان تہ امیک سیر کٔرتھ یوان۔ پرن والۍ سند یہ تجربہ چھہ ادبک حاصل۔ شاعرس چھیہ او٘ت تام تہِ واتنچ کوشش کرنۍ۔

یمو کتھ الگ، مشروع چھہ دینی یا تصوف کین موضوعن سیتۍ دلچسپی تھاوان۔ مگر اگر نہ یتھین موضوعن باریک فکری پہلو نیرن تہ اگر یم معلوماتن تہ ویدین اظہارن تامے محدود روزن، تتھ ہیکو نہ شاعری ؤنتھ۔ میہ چھیہ خوشی تصوف چہ دلچسپی کنۍ چھہ مشروع یمن فکری پہلون کن اچھ تلنچ کوشش کران۔ خالص تصوف چھہ نہ سانہِ زمانک غذا۔ کاشر صوفی شاعری چھیہ سۅے اسہِ ونہِ متاثر کران یتھ منز پیٹھمین ژۅن کتھن ہند عمل دخل چھہ۔

ذاتی طور چھس بہ سمجان زِ شاعر یا کانہہ تہِ ادیب چھہ پننہِ فن کہ ذریعہ انسانی وجودس، انسانی رشتن تہ کایناتس منز تنوع تہ تتھ تنوعس منز وحدت ژھاران، لہذا ہیکہِ نہ اکھ ادیب اعتقادی، علاقایی تنگ نظری منز بند گژھتھ۔ اور کُن چھہ خیال تھاوُن ضروری۔

نظم اکھ

بصد تعشوق
آں خلاق
سیاہ سٔدرس چھہ لایاں تھاہ
اناں کھالِتھ مُخیُّل شُد
دُر مکنون
سریرِ غیبہ پیواں پھی٘رۍ  پھ٘یرۍ
سرِ قرطاسِ آفاقس
کزلۍ جامن اندر ظاہر گژھان
کم کم سرخ انہار
نِواں مہۍ مہۍ متین وچھتو
یہ کمہِ ہاوسہ تہ کمہِ امارہ
یہ غیبک غیب گژھاں اظہار

 

نطم زہ

نیندر رٲو
تسند تعشوق چھا
ہاوس پنن وبالۍ  کران؟
کنِہ خوف؟  وسوسہ؟
یہ زندگی، معنہ کیاہ چھس ؟
تہ موت بیاکھ عالم؟
یتیک ویو٘د ماحول
تتیک بیہ پے  بے
وہۍ،  اتھۍ دۅلابس منز
شیہج، مژ تہ مژھج
نیندر رٲو

 

نظم تریہ

زِ قدم  آو آدم
سیتۍ ہیتھ غم
ژھنتھ نالۍ زنمہ ہانکل
قرنہ وادو پیٹھہ
سجاوان جہان کاف و نون
بصورت شوق بہ باطن غم
دوان تھکہ رو٘س دوان ماتم
لبان زاین مران کر کر
یو٘ہے شر ہیتھ تا محشر

ژہ کمس کیا چھکھ ۔۔ اکھ غزل

Tsa kamis

فیس بکس پیٹھ لو٘بم پنن یہ غزل یُس فی البدییہ وننہ اوس آمت۔ از باسیوم اتھ منز کیاہ تام یمہ کنۍ دوپم تھاوون اورۍ بلاگس پیٹھ رژھرتھ۔

 

ژہ کمس کیا چھکھ کمۍ سند کُس
چھہ تمس تمۍ سند یمۍ سند یُس

ہُہ تہِ چھہ ہمس کیت ہمہِ یمہِ سان
بہ تہِ کُس کس کیت کھنہِ بوبس

کیازِ چھہ کمہِ مۅکھہ کِتھہ کنۍ کیا
آسہ تہ آسہ نہ، چھس نتہ چھُس

زاس نبس کوہ شنہ موہ کیات
زُتنہِ کیمین ہند کل اوسس

کیا چھہ کمس کس کیُتھ کوتاہ
یس یُتھ یوتاہ تس تیتھ  ترُس

یمۍ یمۍ ییلہ ییلہ تیلہ تیلہ زو
پھُس پھُس گُر گُر، گُر گُر پھُس

 

 

اوٚدر گلاب

sabz

 

کرتام لیچھییہ فیس بکس پیٹھ یہ نظمہِ ہنا۔ از لبم اچانک۔ تھاوون ییتہ نس رژھرتھ۔

 

دریاوس کھوٚت آب
دریاوس کھوٚت آب
تھرِ پھوٚل سبز گلاب
تھرِ پھوٚل سبز گلاب
دریاوس ووٚتھ آب
دریاوس ووٚتھ آب
تھرِ پھوٚل وۅزل گلاب
تھرِ پھوٚل وۅزل گلاب
چشمن منز اکھ خواب
چشمن منز اکھ خواب
تھرِ پیٹھ اوٚدر گلاب
تھرِ پیٹھ اوٚدر گلاب

__

تنہا ردیفکۍ نفیس شعر

lone

فیس بک تنہا ردیف وٲلس مشاعرس پیٹھ یس تبصرہ اقبال فہیمن کور، تس چھہ پورہ پورہ حق کتھ کرنک، یمہ اندازہ تس خوش کرِ تمہ اندازہ۔ یُس نہ اقبال فہیمس ٹھیک پاٹھۍ زانہِ سہ گژھہ پریشان ہیو۔ ژکھ تہِ کھسیس۔

ییلہ بہ کینہہ فرماوان چھس، واریاہ چھہ تیتھ آسان یس نہ میہ ونن تگان چھہ تہ واریاہ تیتھ یتھ نہ کانہہ معنی نیران چھہ۔ یہ مسلہ چھہ نہ میونے اوت بلکہ شاید سارنے ادیبن ہند۔

اقبال فہیم نین کینژن کتھن سیتی چھہ نہ میہ اتفاق۔ مثلا لفظ تنہا۔ یم چھہ ونان امیک معنی چھہ نہ "الون (کنے زون)” بلکہ "الوف نیس، ودڈراول، ان کنسرنڈ، ڈیٹیچڈ”۔

بہ چھس ونان تنہا لفظک بنیادی معنی چھہ تی یتھ اقبال انکار کران چھہ یعنی اکیلا، جدا۔ باقی یم معنی امی درج کری متی چھہ، تم چھہ نہ بنیادی معنی بلکہ مختلف سیاقن ہند مطابق علاوہ معنی۔۔ یہ چھیہ شاعرس پننی مرضی سہ کتھ معنی یس منز ورتاوِ کنہِ لفظس۔

یمن شعرن منز تنہا کنہ تہ معنی یس منز ٲسۍ تن، یمن ہندس بہترین شعر آسنس کرہ نہ بہ انکار۔

محمد رمضان:
آسہِ کانہہ تارکھا وچھاں اسہ کن
گاشہ لومبکھ ژھٹاں ژھٹاں تنہا

مظفر عازم:
پوت کٹھس منز کھٹتھ تھواں تصویر
یوت نظر پوت نظر دواں تنہا

شانتی ویر:
تاپہ پھوتۍ ہیتھ ہپارۍ ژلۍ باپارۍ
ہردہ پن سانۍ پے وٹاں تنہا

شہناز رشید:
نجدہ ون کیازِ موٹھ وۅں درویشن
کیازِ پیوو شہر عاشقاں تنہا

فیاض دلبر:
ژۅن کٹھین ہند مکانہ کتھ لوگ وونۍ
دۅن شہن منز بہ چھس بساں تنہا

رفیق راز:
اندرہ کُس تام سرۍ یہ چھس پریزلان
شینہ مٲنیا چھیہ اکھ گلاں تنہا

رخسانہ جبین:
ٲنتھہ روستے سوال نظرو سیتۍ
ٲنہ اندری یہ کس پرژھاں تنہا

علی شیدا:
بالہ پیٹھہ وچھتہ زن پشس سیتۍ پش
آنگنن پھیر پریتھ مکاں تنہا

یتی نہ، پریتھ غزلس منز چھہِ اکھ اکھ زہ زہ شعر یم یمنے شعرن ہندۍ پاٹھۍ داد طلب چھہ۔ بہ ہیکاھ نہ ساری شعر درج کرتھ تکیاز میہ چھہ نہج رسالس تمن شعرن ہند انتخاب سوزمت۔

بہ ونہ بییہ اکہ لٹہ شاعر کتھ معنی یس منز ورتاوِ لفظس، تسنز مرضی۔

باقی یس الگ الگ شاعرن پیٹھ تبصرہ چھہ، تتھ متعلق چھہ نہ میہ کینہہ ونن۔ سو چھیہ اقبال فہیم صابنی راے۔ صحیح تہِ ہیکہ ٲستھ، غلط تہِ ہیکہ ٲستھ۔

فیس بک طرحی مشاعرس پیٹھ تبصرہ

 

شرکا: رفیق راز, شانتی ویر کول, ایاز رسول نازکی, برجناتھ بیتاب, شہناز رشید, خالد بشیر, محمد رمضان, علی شیدا, نثار عظم, ظفر مظفر, الیاس آزاد

 

یہ تبصرہ چھہ  فیس بک کٮن گۅڈنکٮن دۅن مشاعرن منز  (2011) فی البدیہہ، لگ بگ فی البدیہ تہ فرصت سان وننہ آمتین غزلن پیٹھ۔ یمن مشاعرن منز نیو کہنہ مشق کیو تازہ وارد  شاعرو برابر دلچسپی سان حصہ ۔ تریمس مشاعرس منز مظفر عازم سنزِ شرکژ سیتۍ ہریوو اتھ سلسلس وقار۔

غزلس منز چھیہ ذاتی تجربن زیو دنچ کمے پہن ریوایت۔ زیادہ تر چھہ یہ مضمون آفرینی سیتۍ آوراونہ آمت تہ اکثر چھہ یمن مضمونن ہندۍ محرک قافیہ تہ ردیف رودۍ متۍ، یمہ کنۍ اتھ صنفس منز اکھ اجتماعیت تہ اکھ یکسانیت پیدہ گژھنک خدشہ روزان چھہ۔ حقیقت چھیہ یہ زِ مخصوص طرز تہ مخصوص نکتہ نظر تہِ چھہ کمنے شاعرن باگہِ یوان۔ غزلس چھیہ اکثر نوِ زمینہ تہ نوۍ ردیف قافیہ نہ صرف تازہ دم کران بلکہ امکان تہِ  بخشان۔ یمن غزلن منز   تہِ چھہِ امہ رنگۍ کینہہ تجریہ میلان۔ اکھ تجربہ یعنی متحرک حرفس پیٹھ اند واتن وول قافیہ/ردیف چھہ بیک وقت عروضس سیتۍ تہِ تعلق تھاوان۔ فارسی اردو عروضی مشقہ کنۍ  چھیہ نہ مصرعہ کس اندس پیٹھ متحرک حرفس کانہہ جاے۔ امہ بندشہ کنۍ ٲسۍ نہ کاشر ۍ غزل گو تم بے شمار قافیہ/ردیف ورتاوان یم یک حرفی لفظ چھہِ تہ متحرک الاخر چھہِ۔ مثلا بہ، ژہ، تہ، تہِ، ہہ، بیترِ ۔ یتھے پاٹھۍ چھہِ بے شمار فعل تہِ مثلا کرہ، کرِ، گژھہ، گژھہِ، ونہِ، روزِ، روزہ، بیترِ۔وژنن منز ٲس نہ وزنچ کانہہ بندش مگر اتھ منز ٲسۍ گیونہ کنۍ ژھوٚٹٮن مصوتن پیٹھ مشتمل لفظ زیٹھراونہ یوان۔ خال کنُہِ لل واکھس، شیخہ شروکس منز یا نایاب پاٹھۍ کنہِ وژنس منز چھہ متحرک آوازِ پیٹھ مصرعہ اند واتان۔ امین کاملن کوٚر غزلس منز یہ تجربہ  ابتدایی دۅہنے منز تہ تمہ پتہ رود سہ یم متحرک قافیہ/ردیف والۍ غزل منزۍ منزۍ ونان مگر تس ورٲے تل نہ اتھ خاص پاٹھۍ کٲنسہ فایدہ ، حالانکہ اتھ منز چھہِ سانہِ زبانۍ ہندِ نسبت واریاہ امکان موجود۔ اتھ تجربس تُل پتمین شٮن ستن ورین دوران محمد رمضانن فایدہ۔ تمۍ لیکھۍ غزل ہا یمن ہندۍ قافیہ/ ردیف متحرک حرفن پیٹھ اند واتان چھِہ (مطبوعہ نیب)۔ تمۍ ورتاوۍ متحرک حرفن پیٹھ اند واتن والۍ فعل تہِ ردیفن منز۔ مثلا:

رنگ برگن چھکہِ، خوشبو ژھٹہِ، دل شاد تہِ کرِ
تیتھ تہِ کانہہ پوش یمس باد صبا یاد تہِ کرِ  (محمد رمضان)

یوٚہے تجربہ نظرِ تل تھٲوتھ دیت میہ متحرک مصرعس پیٹھ اند واتن وول اکھ طرح، اردو شاعر فرحت احساس سندِ اکہ اردو مصرعک ترجمہ

ہتٮن ہہ دشت مسلسل یتٮن مسلسل بہ

اتھ پیٹھ آیہ کم از کم 7 غزل وننہ یمو منزہ تقریبا سٲری فنی تہ معنوی لحاظہ سیٹھا مارۍ مندۍ چھہِ۔ یمن غزلن منز چھہ اتفاقا تقریبا پریتھ شاعرن گاش، ژونگ، واو استعاراتی طور مختلف معنی برآمد کرنہ خاطرہ ورتاوۍ متۍ تہ یم چھہِ پزۍ پاٹھۍ پننہِ پننہِ غزلہِ منز بہترین شعر:

رفیق رازہ مٮہ نارس اندر زمانا گوٚو
نہ تیز دروتھ بناں چھُس نہ تیز کرتل بہ  (رفیق راز)

میہ روٚس نہ کانہہ تہِ اکھا واوہ ہالہِ زالاں ژونگ
گوٚمت خدایہ ظہرۍ پورہ پاٹھۍ پاگل بہ  (شہناز رشید)

چھہ میون شہہ تہِ گوٚبے میانہِ براندہ کس ژٲنگس
ژہ سونچ پانہ زِ واوس ہیکا کڈتھ کل بہ  (برجناتھ بیتاب)

چھہ گاشہ نوو ژ‎ۅاپارۍ اچھ کٔرتھ ژرژان
چھکن کپارۍ الہی یہ رٲژ ہند ملبہ  (محمد رمضان)

وچھاں یتھے بہ چھُسن آنگنس اژان یہ گاش
دوان تارۍ برس چھس تہ دارِ ہانکل بہ  (نثار عظم)

ہہ گاش ییہ تہ خبر ہییہ نہ رٲژ پہرن تام
فضول دارِ پٹٮن کیازِ تھاوہ ہانکل بہ  ( الیاس آزاد)

رفیق راز سندس شعرس منز اگرچہ گاشک استعارہ ورتاونہ چھہ نہ آمت مگر نارچھہ بہرحال گاش تہِ ژھٹان۔ اتھ شعرس منز چھہِ بیک وقت زہ متضاد مضمون۔ گۅڈنچہ نظرِ منز چھہ باسان زِ متکلم چھہ نارس منز ٲستھ تہِ نہ دروت بنان تہ نہ کرتل، مگر "تیز” لفظہ چہ کلیدی حیثیژ کن وچھتھ چھہ یہ مضمون برونہہ کن یوان زِ نار ہیکہِ درٲتس یا کرتلہِ  آکار دتھ مگر تیز ہیکیکھ نہ بنٲوتھ، چاہے تم کٍتس تہِ کالس اتھ اندر تپاونہ یِن۔ یہ چھہ "ساری دراے پۅختہ تے بے دراس اوم”  کہ قبیلک اکھ نفیس مضمون ۔شہناز سندس شعرس منز چھیہ ناسازگار حالاتن منز کوشش کران روزنچ کتھ یۅس امہ کنۍ بظاہر پاگل پن باسان چھہ تکیازِ یہ شخص چھہ اتھ عملہِ منز کُنے زوٚن۔ ساری چھہِ لوٚب کتھتۍ متۍ۔ یہ مضمون تہِ چھہ نہ نوٚو البتہ موجودہ حالاتن مدنظر چھہ برمحل۔ برجناتھ بیتابن چھہ پننس شعرس منز اکھ بالکل نوٚو مضمون اوٚنمت یمہ مطابق ژونگ اکہ نوزک روایژ ہند استعارہ بنان چھہ یُس امس شخژہ سند گرہ روشن کٔرتھ  چھہ۔ اتھ روایژ چھہ امس شخژہ سنزو زندہ روزنہ چیو پننیومجبوریو کنۍ تہِ خطرہ لاحق۔ یمس شخژس امہ روایژ ہند یوت خیال آسہِ زِ سہ کرِ یہ دپۍ زِ تہِ شہہ ہینس پیٹھ تہِ ضبط، سہ کتھہ پاٹھۍ دِیہ تتھٮن اسبابن دعوت یم اتھ روایژ پورہ پاٹھۍ ژھیتہ نِن کٔرتھ۔ امہ مضمونچ عذرخواہی چھیہ بیتابس اکس خاص صورت حالس پیش نظر سنیمژ یس اسہِ سارنی ویوٚد چھہ۔ محمد رمضان سند شعر تہِ چھہ بیتاب سندِ شعرکۍ پاٹھۍ اکھ نوٚو مضمون ہیتھ۔ مگر اتھ منز چھہِ گاشچ پرسانفیکیشن (اچھ کٔرتھ ژرژان) تہ "رٲژ ہند ملبہ” ہش اختراع کرنہ آمژ ترکیب تہ امکۍ استعاراتی معنی زیادہ توجہ طلب۔ رمضانن چھہ پننس غزلس منز غلبہ/ طلبہ/ملبہ ہوۍ قافیہ ورتٲوتھ جدتس کٲم ہیژمژ۔ یہ شعر چھہ معنوی طور مبہم تہ فکرمندی ہنز دعوت دوان۔ متکلمس چھہ منہدم رٲژ ہند ملبہ بار گراں بنیوومت یس نہ تس نیبر کن چھکنس وار چھہ۔ امچ شکایت خدایس کن کٔرتھ چھیہ امچ معنوی تہہ داری ہران۔ نثار عظم سندس شعرس منز چھیہ نہ فکرمندی مگرامۍ تہِ چھہ گاش رمضاننۍ پاٹھۍ شخژوومت تہ شعرس منز اکھ نوٚو مضمون تہ معنوی امکان پیدہ کرۍ متۍ۔ گاشس سیتۍ "یہ” لفظک ورتاو چھہ توجہ طلب۔ اکثر چھہِ یتھۍ ہریمانہ لفظ وزنہ برابری خاطرہ تولس تراونہ یوان مگر یہ شعر چھہ امۍ لۅکٹۍ لفظن کتہِ کور واتنوومت۔ شعرس چھہِ کم از کم زہ معنی ممکن۔  یہ گاش چھہ نہ عام گاش یا سہ گاش یمچ توقع چھیہ بلکہ تیتھ گاش یتھ متکلم "یہ گاش” ؤنتھ لگ بگ طنز کران چھہ۔ متکلم چھہ نہ اتھ قطعا گرس اندر دعوت دنہ خاطرہ تیار۔ غیر طنزیہ معنی ہیکیس یہ نیرتھ زِ متکلم چھہ نہ گرہ کٮن سِرن ننیر گژھنہ کہ خدشہ کنۍ گاشس اندر ینچ کانہہ وتھ دوان۔ دۅشونی صورژن منز چھہ یہ شعر المناک صورت حال پیش کران۔ نثار عظم سند شعرس قریب چھہ الیاس آزادن شعرمگر اتھ منز چھہ اتھ مخالف مضمون گنڈنہ آمت یس سیٹھا دلچسپ چھہ۔ یہ مضمون تہِ چھہ نوٚو تہ نایاب تہ اکھ تیتھ صورت حال خلق کران یس سیٹھا معنی آفرین چھہ۔ امہ خدشہ زِ گاش ہییہ سانٮن رٲژ پہرن تام حساب، چھہِ اسۍ بلیک آوٹ کٔرتھ ینہ والہِ وقتکۍ امکان پانس پیٹھ حرام کٔرتھ نوان۔ یہ چھہ اکھ بہترین مضمون۔

یم ساری شعر پٔرتھ چھہ یقین سپدان زِ سانۍ نوۍ نوۍ شاعر چھہِ نہ صرف نوٮن استعارن تلاش کران بلکہ پرانٮن استعارن منز تہِ نوۍ امکان تہ نوۍ معنی پیدہ کرنچ سۅد بۅد تھاوان۔ پیٹھہ کنہِ دنہ آمتۍ ہوۍ کامیاب شعر چھہِ پزۍ پاٹھۍ کاشرِ شاعری ہنزِ خۅش آیندگی ہنز ضمانت پیش کران۔

پیٹھمہِ طرح کس "بہ” ردیفس مقابلہ اوس بییس طرحس منز "سٲری” ردیف وول رفیق رازُن اکھ مصرعہ دنہ آمت۔ اتھ طرحس پیٹھ موصول غزلو منزہ چھہِ کینہہ شعر پیش یم توجہ طلب چھہِ۔

ژانگۍ ہوۍ اسۍ راتھ کیت شولاں چھہِ سٲری
زیر لج پردس تہ بس لرزاں چھہ سٲری (رفیق راز)

شرۍ جماتھا چھم تہ گرہ چھم ونہِ تہِ وہرتھ
کُس اتر کوٚرمت یہ چھکھ مندچھاں چھہِ سٲری (شانتی ویر)

اکھ ہوا رنگ، آبہ جۅے، بلبل تہ جنگل
یتھ دلس گدرس میہ تنبلاواں چھہِ سٲری (خالد بشیر)

ٲس کمہِ پوشچ سۅ خۅشبو اسہِ ژۅاپارۍ
وۅنۍ ستن وارٮن اندر ژھاراں چھہِ سٲری (محمد رمضان)

گاش کوٚرمت چھکھ دفن غارن گۅپھن منز
انہِ گٹس منز قد پنن میناں چھہِ سٲری (ظفر مظفر)

یس وسے سونچاں بہ دمہا نالہ اتھ منز
یتھ سیکستانس توے زاگاں چھہِ سٲری (نثار عظم)

رفیق راز نہِ غزلک مطلع چھہ اکھ پراسرار صورت حال پیش کران چھہ، یتھ منز  نامعلوم خوف، پردہ، شولونۍ ژانگۍ اکھ داستان بیان چھہِ کران یتھ سانہِ نفسیاتی زندگی سیتۍ تعلق باسان چھہ۔ شانتی ویر سند شعر چھہ غزلہ کیو روایتی مضمونو نیبر نیرتھ اکس خاص سماجی، اقتصادی صورت حالس کن اشارہ کران۔ غزلکۍ ایمایی مضمرات چھہِ ییتیاہ قوی آسان زِ میہ چھہ شانتی ویر سند یہ شعر غالب سند مشہور شعر یاد پاوان” ہزاروں خواہشیں ایسی۔۔۔” خالد بشیر سند شعر چھہ اکھ عام مضمون اکس خوبصورت اندازس منز پیش کران۔ یہ شعر چھہ سٲنس مخصوص سیاسی صورت حالس کن تہِ اشارہ کران یتھ منز عام انسانہ سنز سادہ مزاجی ظاہر چھیہ۔ محمد رمضان سند شعر چھہ ہاوان زِ تمن چیزن ہندس راونس پیٹھ کتھہ پاٹھۍ  چھہ انسان پایس پیوان یم سہ  فار گرانٹڈ نوان چھہ۔ یہ شعر چھہ یقین تہ روحانی قدرن ہندس راونس کن اکھ بلیغ اشارہ۔ ظفر مظفر سند س شعر س منز چھہ گاش غارن منز دفن کرُن اکھ دلچسپ تضاد پیش کران۔ امہ شعرک علامتی پہلو چھہ ظاہر۔ یہ شعر گژھہِ پتمہ طرح کٮن گاش کس استعارس سیتۍ تعلق تھاون والٮن باقی شعرن سیتۍ پرُن۔ نثار عظم سند شعر تہِ چھہ سیٹھا دلچسپ ۔یتھ  بیہ وقعت سیکستانس کن کانہہ کانہہ مجبورا لگان اوس تتھ چھیہ تیژ تھپہ تھپھ زِ پریتھ کانہہ چھہ یہ دپۍ زِ تہِ زاگان۔ یہ شعر چھہ جبر تہ مجبوری ہندِ حبسہ دمک صورت حال پیش کران ۔

بیاکھ طرحک مصرعہ اوس عبدالاحد آزاد سند اکھ مصرعہ "آسمانن دامنس تل رٹ زمین”۔ اتھ پیٹھ وننہ آمتٮن غزلن ہندۍ زیادہ متاثر کرن والۍ کینہہ شعر چھہ درج:

اسۍ چھہِ کوتر لامکانکۍ وپھ تُلو
تل پتالس سیتۍ کرۍ تن أٹ زمین (رفیق راز)

سیتۍ اوسم شنیہس منز سرۍیہ ژونگ
ٲس شانن پیٹھ میہ تجمژ مٔٹ زمین (ایاز رسول نازکی)

آسمانچ شبنم افشانی بجا
وقتہ کٮن زخمن چھیہ مرہم پٔٹ زمین (محمد رمضان)

تالہِ پیٹھ دوٚدمت شہل ون یارِ ہند
تل پدٮن شیدا چھیہ اڈ دٔز ۂٹ زمین (علی شیدا)

اتھ طرحس منز اوس غیر مستعمل قافیہ  یمہ کنۍ شعر بناونۍ مشکل تہِ اوس تہ پرامکان تہِ۔ رفیق رازن شعر چھہ انسانہ سنزِ روحانی حقیقژ کن اکھ بلیغ اشارہ۔ انسان چاہے کنہِ تہِ سنگین دۅلابس پھسہِ، سہ ہیکہِ نہ تتھ منز زیادہ کالس قید روزتھ یوٚت تام تسند خمیر تہ ضمیر صاف آسہِ۔ تقریبا یژھے ہش کتھ وننہ خاطرہ یم پیکر تہ استعارہ ورتاونہ آمتۍ چھہِ تم چھہِ سیٹھا دلچسپ۔ کوتر چھہِ تمن جاناوارن منز   یم زمینہِ تھوٚد آسمانس منز پرواز کران چھہِ۔ تلپتال چھیہ سۅ جاے یمہ منزہ نیرُن مشکلے اوت نہ بلکہ ناممکن تہِ چھہ۔ وپھہِ منز چھہ موٚر ترٲوتھ ژلنک تہِ معنی موجود۔لامکان، تل پاتال، کوتر  لفظن ہند ورتاو ہ تہ زمین تہ تل پاتال سیتۍچھہ اتھ شعرس منز داستانوی رنگ پیدہ گوٚمت۔ ایاز رسول نازکی چھہ عجیب غریب صورت حالک اظہار کران۔ اتھ منز تہِ چھہ اکھ نیم داستانوی فضا قایم گژھان یتھ منز سرۍیہ ژٲنگس برابر مۅژان چھہ تہ زمین چھہ مچہ ہندۍ پاٹھۍ شانن لدتھ متکلم شنیاہ کس سفرس پیٹھ نیران۔ یتھٮن شعرن چھہِ نہ لفظی معنی قایم گژھان بلکہ چھہ اکھ مبہم تاثر وۅتلان یس معنوی امکاناتن کن اشارہ کٔرتھ ہیکہِ۔محمد رمضان سندس شعرس منز چھیہ قول نبنچ قابلیت موضوع مطلب تہ ارتکازہ کنۍ پیدہ گمژ۔ یہ چھہ غالب سند شعر "رگ لیلی کو خاک دشت مجنوں ریشگی بخشے” تہ اقبال سند شعر "آسماں تیری لحد پر شبنم افشانی کرے” دۅشوے یاد پاوان تہ یمن دۅشونی شعرن ہندۍ معنوی امکانات چھہِ اتھ منز داخل گژھان یم شعر کس مبہم صورت حالس روشن کران چھہِ۔ علی شیدا سندس شعرس منز چھہ تتھٮن مشکل حالاتن ہند اظہار  یم سانۍ حقیقت تہ  سون اعتبار دۅشوے اکی رنگہ اذیت ناک بناوان چھہِ۔ یہ ہشر چھہ ون یارِ  (اعتبار/یقین) تہ اڈ دز ۂٹ (حقیقت) سیتۍ قایم گژھان۔ ون یٲر نہ بلکہ چھہ ون یارِ ہند شہل دوٚدمت یس سانہِ اعتبارک آسن، نہ آسنس منز تبدیل کران چھہ۔

یمن مشاعرن منز یتھۍ یتھۍ شعر برونہہ کن یُن چھہ کاشرِ غزلیہ شاعری ہندٮن توقعاتن منز بے شک  ہرٮرکران۔

گزر ژورِ ہند استعارہ

GUZAR

شہل تہ شوژ چھہ کاشر غزل وناں عازم
ویو تہِ نے تہ گُذر ژورِ ما انتھ ہیکہِ مال

(نیب شمارہ اول اکتوبر 1968)

 

یہ چھہ مظفر عازم سند اکھ مشہور شعر، یمیک چرچہ میٲنس لۅکچارس منز واریاہس کالس رود۔ اتھ منز یۅس کتھ وننہ ٲس آمژ سۅ  ٲس یتھہ کنۍ تہِ دلچسپ خاص کر تتھ وقتس منز ییلہ کاشرِ شاعری منز نویرہ رنگۍ واریاہ کینہہ لیکھنہ اوس یوان تہ نوۍ نوۍ تجربہ کرنہ رنگۍ مختلف ماخذن فایدہ تلنہ اوس یوان۔ مگر امچ دلچسپی ٲس امہِ کس انداز بیانس منز تہِ ۔ یہ استعارہ اوس شاعری ہندِ خاطرہ نو٘و تہ اتھ دورس منز ٲسۍ شاعر پننہ پننہ مقدورہ تہ مزاجہ مطابق  نوۍ نوۍ استعارہ ورتاونچ کوشش کران۔

وچھو ہے تہ اتھ منز چھہِ زہ بیان۔ اکھ  یہ دعوی زِ عازم چھہ شہل تہ شوژ کاشر غزل ونان۔ یہ دعوی چھہ یہندِ غزلہ چہ زبانۍ تہ استعارن ہندس حدس تام واریاہ صحیح۔ یہ اوس تمہ وقتہ تہِ صحیح ییلہ یہ شعر وننہ اوس آمت تہ از تہِ چھہ۔ حرف ڈاے چھیہ امچ گواہی دوان۔ زبانۍ ہندِ رنگہ شوژ کاشر غزل ونن والین شاعرن منز ہیکون اسۍ عازم سرس تھٲوتھ۔ یہ چھہ ساروے کھوتہ شوژ کاشِر زبان ورتاوان۔ میہ باسان یس غزل زبانۍ ہندِ رنگہ شوژ آسہِ، سہ آسہ شہل تہِ۔

دو٘یم بیان چھہ گزر ژورِ ہند۔ مال انن چھہ نہ گناہ مگر یہ مال گژھہِ جایز طریقہ اننہ یُن۔ اگر الیٹ سند قول نظرِ تل تھاوون (حالانکہ الیٹن تہِ چھہ یہ قول بیۍ سے ژورِ نِتھ ورتومت) جایز طریقہ چھہ نقل کرنہ بجایہ ژورِ انن۔ مگر گزر ژورِ ہند استعارہ چھہ اسہِ ونان زِ مال تارنہ خاطرہ چھہ اتھ ٹیکسہ ہن دنۍ ضروری۔ یہ ٹیکس چھہ شاعر نقل کرنہ بجایہ اتھ پننہ زبانۍ تہ روایتس ہم آہنگ بناوان۔ یہ چھہ اتھ کاشراوان۔

مظفر عازم چھہ پننہ شاعری منز اتھ اصولس سختی سان پابند باسان۔ امہ علاوہ چھہِ یم شعرن منز کتھ اشارن منز وننک قایل۔ یمہ ساتہ یم شعرہ نیبر کانہہ کتھ نثرس منز تہِ ونن اشارنے منز ونن یمہ کنی یہ سمجن کنہ ساعتہ مشکل گژھان چھہ زِ تم چھا الف ونان کنہ بے۔

دو٘یمہ بیانک بیاکھ دلچسپ نکتہ چھہ شود تہ شوژ مال نہ ویُن۔ اتھ منز چھہ طنزتہِ تہ پیراڈاکس تہِ ۔ امہ کین معنوی پہلوون چھہِ اسۍ سٲری بخوبی واقف۔

 

 

مظفر عازم صابنی یم لفظ تھاووکھ ییتہ نس بطور یاداشت محفوظ:

گۅڈہ گۅڈہ یم میٲنۍ اردو شعر اذان رسالس منز یا اورہ یور چھپے، تم تۯاوتکھ الگٕے۔ گۆڈنیک کٲشر غزل چھپیو کۅنگہ پوش رسالس منز۔ دلیل بنییہ، جرنلسٹ مقبول حسین اوس مے یار۔ (شاید آسہ ہے 1954\1955) ۔ مقبول حسینن وۆن یہ دمو کۅنگہ پوش کس اڈیٹر، فراق صٲبس۔ بہ اوسس ازۍکی پٲٹھۍ تیلہ تہ مندچھہ بتھ ۔ مقبولن نیونس پانس ستۍ فراق صٲبن گرہ، غزل پۆرم تمس نشہ، تمۍ کۆر پسند تہ چھپیوو۔ یہ وۆنمے امہ کنۍ زہ سہ غزل چھم نہ کنہ اتھہ یوان، مگر اکھ شعر تمہ منزہ یتھ فراقن داد دژوو سہ اوس اتھۍ ژٲنگس زُتنۍ ہاوان: لٹِس اکھ گاشہ لٕے آسٕم پننۍ وتھ پانہ پۯزلٲوم یتُے وۆن زُتۍنہ وولن تارکن ہند بوش اسمانن (مے اوس لیوکھمت تارکن ہند تاو، فراق صٲبن دۆپ بوش لیکھوس، یُتے چھم یاد)۔

ملہ بابن سادن

shesh

 

میہ دین چھپریوو چانہِ قصدن تے
ملہ بابن سادن

(رحمن ڈار)

سوال: لفظ چھا چھپریوو (کامل) کنہ چھوریو (ساقی)؟

جواب: کاشرس منز چھہ تحقیق کم تہ ذاتی پسند زیادہ چلان۔ کنہِ تہِ بٲتک متن کمۍ کمہِ نسخہ پیٹھہ تل تہ نسخہ کتہِ چھہ، تہِ چھہ کم پہن نظرِ گژھان۔ `کامل سندس صوفی شاعرس چھہ صفحہ پتہ صفحہ حاشیس منز مصرعن ہندۍ مختلف پاٹھ دنہ آمتۍ اکثر کنہِ ذاتی تبصرہ ورٲے۔ کتابہ پتہ کنہ چھہ نسخن ہند فہرست تہِ درج۔ یہ چھیہ امچ خوبی۔ ساقی سندس صوفی شاعرس منز  چھہ خالے کنہِ حاشیہ، ییتہ دیتمت چھن اکثر کاملس سیتۍ اختلاف کرنہ خاطرہ۔ حاشیہ نہ دنک وجہ چھہ یہ زِ تمۍ چھہ پنن متن حتمی زونمت۔ یہ چھیہ امچ کمزوری۔

ساقی چھہ اختلاف کران تہ ونان "چھپریو چھہ صوفی شاعر کتابہِ (کامل سنز) منز درج ییلہ زن عام نسخن منز  چھوریو چھہ”۔ مگر یہ چھہ نہ ونان یم عام نسخہ کم چھہ‏؟ کیا تمن نسخن چھنا کانہہ ناو؟ تحقیق چھہ ونان نسخن ہند ناو ہیتھ ونن ز یتھ یتھ نسخس منز چھہ چھپریو بدلہ چھوریو۔ چلو مون زِ عام نسخہ چھہ پزۍ پاٹھۍ تم نسخہ یمن منز چھوریو درج چھہ۔ اگر یہے حقیقت چھیہ، تیلہ گوژھ نہ ساقی ونن "میانۍ کنۍ چھہ چھوریو درس۔” میانۍ کنۍ ؤنتھ چھہ ساقی پننین عام نسخن ہنز دلیل کمزور بناوان۔ اگر عام نسخن منز "چھوریو” چھہ، پتہ چھہ نہ میانۍ کنۍ چانۍ کنۍ کانہہ معنی تھاوان۔اگر اتہِ نس کانہہ بے معنی لفظ آسہِ ہے تیلہ ہیکہ ہو عام نسخن پیٹھ بحث کٔرتھ زِ اصل لفظ کیا گژھہِ آسن۔ چھپریو تہ چھوریو چھہ بامعنی لفظ تہ دوشوے چھہ اتھ سیاقس منز معنی دوان۔

حقیقت چھیہ یہ زِ واریاہ لفظ چھہ نہ صحیح پاٹھۍ نسخن منز درج یمہ کنۍ تم پریتھ شخص پننہِ حسابہ پران چھہ۔ کیا پتاہ چھپریو/چھوریو تہِ ما آسہِ یتھی کنہِ صورت حالک نتیجہ۔

چھپرُن گو٘و کانہہ مراد حاصل کرنہ خاطرہ منگہ منگ کرنۍ (کاشر ڈکشنری)۔  مطلب چانہِ باپتھ ووتس بہ ملہ بابن تہ سادن تام منگنہِ۔ یہ معنی چھہ نہ اتھ سیاقس منز وۅپر کینہہ۔  ساقی چھہ ونان ” یعنی چانہِ باپتھ گذٲر میہ دۅہ چانہِ برٲنژ نژۍ نژۍ تہ گندۍ گندۍ۔” اتھ معنی یس چھہ نہ "ملہ بابن تہ سادن” مصرعس سیتۍ کانہہ واٹھ لگان۔ البتہ ہیکو ؤنتھ امہ برونہمس مصرعس سیتۍ چھس واٹھ لگان۔ مگر تتھ منز چھہ مسلہ یہ زِ اکثر چھہ سانہِ شاعری منز زہ مصرعہ اکھ شعر بناوان یُس اکھ معنوی کُن بنان چھہ۔ امہ برونہم مصرعہ چھہ نہ اتھ سیتۍ رٔلتھ شعر بناوان۔ دویم یہ زِ تیلہ چھہ "ملہ بابن سادن ”  مصرعہ یتیم گژھان۔

ساقی سند چھوریو ییہ نہ توت تام صحیح ماننہ یوت تام نہ تسندۍ محقق تمن عام نسخن ہندۍ ناو ہین یمن منز چھوریو درج چھہ۔ یا یوت تام نہ تسندۍ نقاد تسندس بیان کرنہ آمتس معنی یس "ملہ باین سادن ” مصرعس سیتۍ واٹھ دِتھ ہیکن۔

کاملن چھہ حاشیس منز "ملہ بابن سادن” مصرعک محتلف پاٹھ تہِ دیتمت۔” گوش تھاو فریادن”۔ ساقی چھہ نہ یہ پاٹھ دوان، حالانکہ مختلف پاٹھ  رژھرنۍ چھیہ محققن ہنز ذمہ داری۔

______

یاونہ ٲسس تن ناون تے
ہاوسہ چھہ نہ چھاون

کیا ونہ کیتۍ گیہ اتھہ ہاون تے
یہ دنیا چھہ تاون

بہ چھس نہ ویتراون تے
تس چھہ نہ کانہہ تہِ باون

(رحمان ڈار)

سوال: یتھے کنہ چھہ بوونہ لفظس معنے لیکتھ کیا ونہ۔ تی چھا؟

جواب: نہ تہِ چھہ نہ۔

کیا ونہ کیتۍ گیہ اتھہ ہاون تے

کامل چھہ مصرعہ یتھے پاٹھۍ دوان۔ سیتی چھس حاشیس منز "کیا” بدلہ "بہ” دوان یُس بیاض رحمان ڈارس منز درج چھہ۔ ساقی چھہ مصرعہ یتھہ پاٹھۍ دوان:

بۅ ونہ کیتۍ گیہ اتھہ ہاون تے

کاشرس منز چھہ /بہ/ بدلہ زنانہ ہندِ طرفہ /بۅ / تہِ رایج۔ ساقی چھہ کامل سندِ حاشیک /بہ/ تُلتھ اتھ /بۅ/ بناوان یمہ کنۍ وۅنۍ یہ ذو معنی بنان چھہ۔ بۅ+ونہ (یعنی میں کہتی ہوں)  تہ بۅون یعنی بتراتھ۔  ظاہر چھہ "بہ ونہ” چھہ نہ زیادہ معنہ سوو، لہذا چھہ ساقی بۅونہ بتراژ ہندِ معنی کنۍ دوان۔  سہ چھہ نہ حاشیس منز کیا ونہ معنی رنگۍ دوان بلکہ چھہ تمۍ حاشیس منز  "کیا ونہ” کامل سندِ پاٹھچ ریفرنسہِ کنۍ دیتمت۔

وۅنۍ چھہ سوال دۅیو منزہ کس پاٹھ چھہ صحیح۔ امیک فیصلہ ہیکہِ صرف ذاتی ترجیح سیتۍ گژھتھ، نتہ گژھہِ نسخن ہنز شہادت آسنۍ۔ کیا ونہ چھہ صوتی طور تہِ تہ معنوی طور تہِ میانہِ خاطرہ زیادہ دلچسپ، یہ زٲنتھ زِ اتھ بٲتس منز کوتاہ اہم قافین ہند آہنگ چھہ۔/ کیا ونہ /چھہ امہ بندہ کہ گۅڈنکہ مصرعہ کین  /یا ونہ / لفظن سیتۍ ہم قافیہ۔ اتھۍ سیتۍ اوت نہ بلکہ دویمہ مصرعہ کہ /چھا ون/ لفظن سیتۍ تہِ۔ یُتے اوت نہ ژورمہِ، پانژمہ تہ شیمہ مصرعہ کین لفظن /تاون/، /ویتراون/ تہ /باون/ لفظن سیتۍ تہِ ہم قافیہ۔ بہ کرہ نہ ذاتی طور یمن قافین ہند ساز ؟/بۅون/ اننہ خاطرہ قربان تکیازِ بۅون أنتھ چھہ نہ شعرکس معنی یس منز کانہہ ہریر یا تبدیلی گژھان۔ بلکہ چھہ امہ مصرعہ پتہ ینہ والہ مصرعہ کس /دنیا/ لفظس مقابلہ اکھ رڈنڈنسی پیدہ گژھان۔ امہ علاوہ چھہ /بو چھس نہ ویتراوان/ مصرعہ کہ /بو  / لفظہ کنۍ تکرار  تہِ پیدہ کران۔ یہ چھہ نہ قافین ہند صوتی تکرار بلکہ اکوے لفظ دویہ لٹہِ ینک تکرار یس اگر کنہِ مخصوص تاثر خاطرہ اگر ورتاونہ آسہِ نہ آمت، مستحسن چھہ نہ ماننہ یوان۔

___________

ستن زرمن میہ چھہ ورتنتے
وصل چھہ ہر ساتن

(رحمن ڈار)

سوال: ساقی چھہ لفظ ورتن بدلاوان تہ دپان درمن چھہ درُس، چھا؟

جواب:  یمو منزہ کس اکھ چھہ صحیح، سہ ہیکہِ رحمن ڈار ؤنتھ۔  توہہ آسہِ نہ توجہ دیتمت۔ کامل چھہ دوان ” وصل چھہ ہر ساتن” تہ ساقی چھہ دوان "وصل چھم ساتن”۔ میانہِ خیالہ چھہ یمن دۅن لفظن یعنی ورتن تہ درمن ہند صحیح آسن نہ آسن دویمس مصرعس پیٹھ دٔرتھ۔ اگر کامل سند دیتمت مصرعہ صحیح چھہ تیلہ چھہ ورتن صحیح، اگر ساقی سند مصرعہ صحیح اوس، تیلہ چھہ درمن صحیح۔

 

یم سوال ٲسۍ مظفر عازم صابن فیس بکس پیٹھ پرژھمتۍ، کٲنسہ دیت نہ جواب۔ میہ دیت جواب۔