{یا}، {نتہ} تہ {کنہ}

 

grammar

شفیع شوق چھہ "کاشریک گرامر” کتابہِ منز جملیاتس تحت (2۔2۔5۔5۔) پیٹھمین ترین لفظن ہندس استعمالس بحیثیت کنجکشن جان پاٹھۍ واضح کران، مگر دۅن کتھن پیٹھ روزِ یہ تبصرہ شاید مفید۔

شوق چھہ لیکھان: "{یا} بجایہ ہیکو کُنہِ کُنہِ {نتہ} ورتٲوتھ۔ {یا} تہ {نتہ} چھہِ ہم معنی بنان۔ فرق چھیہ یہ زِ {نتہ} چھہ منفی واٹت۔”

مثال چھہ دوان یم زہ جملہ:

  • ژہ کرۍ زِ شامن فون یا کرۍ زیم ای میل۔
  • ژہ کرۍ زِ شامن فون نتہ کرۍ زیم ای میل

میانہِ خیالہ چھہِ نہ یم زہ ورتاو ہم معنی۔ {یا} بجایہ چھہ پیٹھمس جملس منز {نتہ} مگر دۅشونی جملن ہند معنی چھہ نہ کُنے۔ {یا} چھہ زہ آپشن دوان یتھ منز دۅشوے صحیح تہ ممکن چھہِ۔ {نتہ} چھہ گۅڈنکہ آپشنچ کمزوری ہاوان۔ گۅڈنکہ آپشنک وقوع چھہ مشکوک۔ یعنی اگر کنہِ وجہ کنۍ فون کرن ممکن آسہ نہ  یا زحمت بنہِ، تیلہ کرۍ زِ ای میل، یتھ منز متکلمس مخاطب سندِ خاطرہ آسایش باسان چھیہ۔۔ لہذا چھہ {نتہ} شرطیہ کنجنکشن بنان۔ گۅڈنکس جملس منز چھہِ دۅشوے انتخاب برابر ممکن، دویمس منز چھہ یہ شرطیہ۔ امہ کنۍ ہیکو اسۍ ؤنتھ زِ یم چھہِ نہ ہم معنی۔

{کِنہ} کنجکشنس متعلق چھہ شوق ونان "{کِنہ} چھہ {یا} ہکۍ پاٹھۍ واٹت بٔنتھ متبادل صورت ہاوان۔ یہ ہیکہ دۅن سادہ بیانن، اکس بیانس تہ اکس سوالس، اکس حکمس/عرضس واٹون کٔرتھ۔”

یمن ہنز مثالہ چھہ یتھہ پاٹھۍ دوان

  • ژہ کر کمپیوٹرس پیٹھ کٲم کِنہ بہ کرہ پانے۔
  • سہ آو پیدل کِنہ سکوٹرس پیٹھ!
  • ژہ نیر سلی کِنہ تس پرارکھ؟
  • ژہ بناوکھنا چاے کِنہ بہ بناوہ پانے

یمو مثالو پتہ چھہ شوق ونان "لہجہ بدلاونہ سیتۍ ہیکن {کِنہ} والۍ جملہ سوال تہِ بٔنتھ۔”

امہ بیانہ سیتۍ چھہ شوق پیٹھمین ژۅن ورتاون پانے پھیش دوان۔ اگر یم سٲری لہجہ بدلی سیتۍ سوال بنن، اکھ اہم کتھ چھیہ برونہہ کن یوان زِ {کِنہ} چھہ تیلہ ژکہِ سوالیہ کنجکشن۔ یعنی یہ چھہ دۅشونی صورتن منز سوال قایم کران۔ دویو منزہ ہیکہِ صرف اکھ انتخاب صحیح ٲستھ۔ {یا} کس ورتاوس منز چھہ دۅشوے صحیح آسان۔

لہذا، {کِنہ} چھہ بنیادی طور سوالیہ کنجکشن، لہجہ بدلٲوتھ ہیکنس شاید تم ورتاو تہِ نیرتھ یم شوقن دتۍ متي چھہِ۔ یعنی یہ شوق ونان چھہ تمیک پھرتھ چھہ صحیح۔

یمن کنجکشنن ہندۍ بنیادی ورتاو چھہ یتھہ پاٹھۍ:

{یا} دۅن صحیح بیانن درمیان ورتاونہ یوان

{نتہ} اکس کمزور تہ متبادل بیانس درمیان ورتاونہ یوان

{کِنہ} دۅن سوالیہ بیانن درمیان ورتاونہ یوان

شفیع شوق سند زنتہ غزل

zanta

راتھ گوو فیس بکس پیٹھ شفیع شوق سند اکھ نوو غزل پی ڈی ایف اٹیچمنٹ کس صورتس منز اچانک نمودار، تہ پی ڈی ایف کھلتھ رود واریاہس کالس دلس تہ دماغس آورٲوتھ۔ شوق سندۍ اکثر غزل چھہِ شعرہ پتہ شعرہ کھلان تہ پرن وٲلس مضبوطی سان پننس گرفتس منز نوان۔ امۍ چھہِ امہ برونہہ تہِ واریاہ غزل ونۍ متۍ یم یتھے پاٹھۍ دلچسپ، متاثر کن، معنی تہ ماحول پرور زمین (قافیہ تہ ردیف) کہ دریافتکۍ نمونہ چھہِ۔ غزل چھہ پیش:

زنتہ گندہ باشہ کراں آو سہ آدن زنتہ
زنتہ کیہہ تام دوپن چھکھ ژہ میہ واتن زنتہ

از تہ چھیہ زون پکاں سیتۍ ژیہ پاتھلۍ پرژھنم
زنتہ ببرایہ پھلتھ آیہ سۅ لامن زنتہ

لوب اوسس نہ، نہ کانہہ برم، اونکھ تہ ترووکھ
زنتہ پوک دور تہ ہیتھ آو سہ پانتھن زنتہ

آنگنہ چہ یارِ وری ساس گژھتھ بو ژھورس
زنتہ کاون وہاں بوو یہ شامن زنتہ

خوابہ منزۍ خواب منزۍ خواب وچھن کم چھا
زنتہ بر ووتھ چھہ گژھاں بند چھہِ ڈیشن زنتہ

بیون تہ نون روے ژیتس آو بیہ بتھۍ بیرِ اندر
زنتہ بازر نہ، گہل سرون تہ شہل ون زنتہ

از تہِ یخ بستہ چھہ موسم تہ گرم کل چھیہ مگر
زنتہ پھول سونتھ تہ مشکیوو زبر ون زنتہ

دوررکۍ پردہ ملاقاتہ طلب زورآور
زنتہ شوقس چھہ مژر ڈیشہِ یہ ہن ہن زنتہ

شاعری کیا چھیہ اگر نے یہ وضع کانہہ پھٹری
زنتہ گتہ گیور گندر معنہ تہ متنن زنتہ

میہ کٔر زمینچ کتھ۔ امہ غزلہ کس دویمس دویمس مصرعس منز چھہ غزلک کلیدی لفظ "زنتہ” دۅیہ لٹہِ اننہ آمت، شروعس منز تہ اندس پیٹھ۔ یۅہے چھہ امیک بل تہ ول۔ غزلکۍ سٲری تجربہ چھہِ امی زنتہ پیٹھہ زنم لبان تہ اتھۍ زنتہ ہس پیٹھ زایل گژھان۔ یہ ول چھہ امہ کین تجربن ہنز شدت پرن وٲلس کامیاب پاٹھۍ ژینناوان۔ قافیہ تہ ردیف چھہ باقین لفظن سیتۍ رٔلتھ /ن/ آوازِ ہند اکھ زبردست تکرار پیدہ کران یمہ کنۍ اتھ غزلس اکھ مخصوص صوتی کردار میلیومت چھہ۔ امیک ردیف ژھۅچہ آوازِ پیٹھ اند واتنہ سیتۍ تہِ چھہ یہ غزل الگ ہیو نیران۔ پتیمن دہن ورین منز گوو متحرک آوازن پیٹھ اند واتن والۍ قافیہ/ردیف ورتاونس منز ہریر یمہ کنۍ آہنگس منز خوشگوار تبدیلی ہند احساس گژھان چھہ۔ زمین کتھہ پاٹھۍ ہیکہِ غزلہ کس معنیس ہم آہنگ ٲستھ، یہ غزل چھہ امچ اکھ بہترین مثال۔ کیا چھہ وننہ آمت تہ کتھہ پاٹھۍ چھہ وننہ آمت، یم دۅشوے چیز چھہِ میانہِ خاطرہ مساوی طور اہم، مگر شوق سند یہ غزل چھہ ‘ کتھہ پاٹھۍ چھہ وننہ آمت’ چہ اہمیژ ہنز تہِ اکھ بہترین مثال پیش کران۔ شوق چھہ نہ یمن شعرن منز شاید تیتھ کانہہ تجربہ پیش کران یُس تمہ کہ ‘کیا چھہ وننہ آمت’ کہ وجہہ اہم آسہِ، حالانکہ شوق چھہ پننین غزلن منز سۅ کٲم تہِ آسانی سان تہ کامیاب پاٹھۍ کٔرتھ ہیکان۔ مثلا یہ شعر:

اپارِ کٹھہِ شبس بزم روز سحرس تام
یپارِ میون کُنیر ہُن، ہنیوو تور نہ اپور

امہ قسمکۍ شعر چھہ نہ عام طور غزلس منز میلان یمیک وجہ یہ چھہ زِ غزلہ کین تجربن ہند دایرہ چھہ اتھ صنفس سیتۍ یوتاہ مخصوص زِ تمہ نیبر نیرتھ چھہ شعری جمالیاتک مسلہ پیدہ گژھان۔ تنقید ٲسن، افسانہ ٲسن یا شعر، شوق سنز زبان چھیہ سیٹھا غیر آرایشی تہ واریاہن معاملن منز غیر استعاراتی تہِ ۔ سہ چھہ صرف اکھ صورت حال پیش کٔرتھ قاری یس آوراونک فن زانان۔

پانس پتہ ینہ واجنین پُیین منز اکہ طرفہ پنن آدن کال وچھن تہ سیتی دوشویی طرفو دوریر تہ واتنییارک مسلہ تہِ ژینن ، یہ چھہ گۅڈنکہ شعرک موضوع۔ شرس تہِ چھیہ پتاہ ز یہ شخص چھہ امس کیہہ تام واتان، کیہہ تام امہ مۅکھہ زِ پُیین ہندِ دورِرہ کنۍ چھیہ رشتچ نزدیکی تہ پہچان تہِ متاثر گژھان، یہ کیہہ تام چھہ متکلم سند طرفہ تہِ واتنیار کس مسلس کن اشارہ کران۔ ارادتا گرنہ آمتیو استعاراتی اظہارو نش چھہ شوق دور روزنچ کوشش کران، اگر شعر پانہ اکھ استعاراتی صورت حال پیش کرِ سۅ چھہ بیاکھ کتھ۔ سارنے شعرن ہنز تشریح چھیہ نہ ضروری تکیاز پریتھ شعر چھہ سیود سادہ لفظن ہند مرکب۔

کینژو شخژو کور یہ غزل فیس بکس پیٹھ نظرانداز شاید امہ کنۍ زِ اتھ منز چھہِ روایتی فارسی عروض کنۍ کینہہ مصرعہ پھٹان، یتھ سیتۍ میہ اتفاق چھہ، مگر زہ کتھہ چھیہ اہم، اکھ یہ زِ شوق سند شعر چھہ باوجود امہ معمولی کمزوری پننہ شعری قوتہ کنۍ متاثر کران، دویم یہ شوق چھہ شاید آہنگ کہ خاطرہ وزن صرف اکھ ریفرنس پواینٹ زٲنتھ ورتاوان۔ تمیک مطلب کیا گوو؟ تہِ فکرِ ترُن چھہ نہ یمن دوستن ہندِ خاطرہ ممکن۔

کاشر رسالہ واد (قسط 8) : شفیع شوق

shauq-Yaad
وادس منز چھپیہ شفیع شوق سندۍ کل تریہ غزل۔ اکھ شمارہ 2 تہ زہ شمارہ 11 ہس منز۔ یم تریشوے غزل چھہِ شوق سنزِ شعرہ سۅمبرنہِ ‘یاد آسمانن ہنز’ منز پوتس شامل کرنہ آمتۍ مگر اکثر شعر چھہِ دوبارہ لیکھتھ بہتر بناونہ آمتۍ ۔ اکثر چھہِ خیال تمے البتہ چھہِ زبان تہ پیکر زیادہ موافق تہ اثردار بناونہ آمتۍ۔

شوق سند غزل اوس وقتہ کہ جبرہ کس نتیجس منز فرد سنزِ بے چارگی رنگہ رنگہ پیش کران۔ یہ بے چارگی چھیہ کنہِ کنہِ خۅد فریبی ہنز شکل تہِ رٹان تہ طنز تہِ چھہ بارسس یوان۔ امۍ سندس غزلس منز چھیہ زیادہ ٹھوس تہ جسمانی لفظ، پیکر تہ استعارہ ورتٲوتھ اکھ الگ وتھ کڈنچ کوشش۔ امس چھہ شعر ظاہری ہیژ علاوہ مضمونو رنگۍ تہِ ازۍ کین فکری تقاضن ہم آہنگ بناونک شوق۔ یہ چھہ پامال مضمونن نشہ پنن غزل شعوری طور دور رٹان۔

واریاہن شاعرن برعکس چھہ نہ شوق سند غزل رسالس منز راوان، بلکہ چھہ یہ یکدم پانس کن متوجہ کران۔ کینہہ شعر:

موسم ڈٔلتھ تہِ کل چھیہ خیالس بہ کیا ونس
خوشبو لبُن یژھاں چھہ گلابس بہ کیا ونس

ڈج وڈرِ پتھ یہ ڈولۍ تہ ڈلۍ نظرِ تاپہ پرنگ
یتھ جایہ تیۍ کہرۍ میہ ونیم وس بہ کیا ونس

پشرن میہ پرانۍ بانہ ڈۅکرۍ وس دوپن ژہ گر
ہیوکمے نہ دِتھ گرتھ میہ موادس بہ کیا ونس

شہرس اگر سرحد چھہ کڈاں کاڈ ژۅاپارۍ
پریتھ کانسہِ پنن حلقہ ژمان کیازِ چھہ باسان

یُس یوت کراں جشنہ زِ آزاد چھہ آدم
سے تیوت مگر پانہ پھسان کیازِ چھہ باسان

خوفہ ہتۍ ٲسۍ اکھ اکس لٲرتھ
اتحادک کمال ہاواں ٲسۍ

از بہ وچھتھس شنلۍ سِرن ہند وٹھ
زیرِ پھۅلہو تہ وۅندہ باواں ٲسۍ

من ندانم فاعلاتن فاعلات

عروض چھہ آہنگ چہ ضابطہ بندی ہند ناو۔ یہ ضابطہ بندی چھیہ پریتھ عروضس منز، خاص کر منظم عروضن منز یمن منز عربی فارسی عروض شامل چھہ۔ یہ چھہ پوز زِ نمونہ وزن (مثلا مفاعلن فعلاتن مفاعلن فعلن) چھہِ مشینی مگر زبانۍ ہندۍ یم متحرک تہ زندہ لفظ یمن نمونن پیٹھ گنڈنہ یوان چھہِ، تم چھہِ امہِ بنیادی آہنگ علاوہ پنن تہِ اکھ زندہ لسانی آہنگ تھاوان یتھ منز لہجہ تہ معنیک تہِ برابر دخل آسان چھہ۔ مطلب یہ زِ مفاعلن فعلاتن مفاعلن فعلن وزن اگرچہ مشینی چھہ اتھ پیٹھ وننہ آمتۍ غزل گژھن نہ مشینی آسنۍ تکیازِ میکانیکی آہنگ کنے ٲستھ تہِ گژھن نہ تم اکی لسانی تہ معنوی آہنگکۍ آسنۍ۔ اگر یُتھ صورت حال برونہہ کن ییہِ سۅ چھیہ لازما شاعر سنز کمزوری، یۅس خاص کر تکرار یا تقلیدک نتیجہ آسان چھہ۔ مثلا اتھ وزنس پیٹھ وننہ آمتۍ کاملنۍ غزل گژھن باقی شاعرن ہندین غزلن نش تہنزِ مخصوص زبانۍ کنۍ اکۍ سے عروضی نمونس پیٹھ ٲستھ تہِ لسانی آہنگ کہ لحاظہ مختلف آسنۍ۔ مثالی وچھن ترایہ کنۍ گژھن اتھ وزنس پیٹھ کاملنۍ ونۍ متۍ غزل تہِ اکھ اکس نش مختلف لسانی آہنگ ہیتھ آسنۍ۔ یہ نکتہ کرون بنمیو ترییو غزلو سیتۍ واضح ۔ اکھ غزل چھہ امین کاملن تہ بیاکھ رفیق رازن تہ بیاکھ شفیع شوقن۔ 

سہ وق سہ رٲژ پہر ییلۍ جگر وہاں آسی
بدن یہ ماز چھنتھ کرنز ہیو مۅژاں آسی
یہ لر تہ کانہِ لگاں کیل ہۅ لر تہ اڈۍ جہ فنا
تہِ پوشہ پان پنن بسترس سناں آسی
(امین کامل)

یِتھے چھہِ باگہ یواں کس مژر تہ خاموشی
سراں چھہ زندہ زوے کُس قبر تہ خاموشی
ژۅپارۍ زنتہ یہ چونے نظارہ بییہ نہ کہنی
ژۅپارۍ زنتہ یہ میانی نظر تہ خاموشی
(رفیق راز)

گژھن تہ اوس تمس گوو گژھتھ سہ آو نہ زانہہ
سیٹھا زمانہ گژھتھ آوہ آو دراو نہ زانہہ
لبن زٔلس چھہ ژشاں مول اندرہ باچھہِ کلا
ہنیوو گٹہِ منزے وۅگہ ووبۍ پھبیاو نہ زانہہ
(شفیع شوق)

یمن ترین غزلن ہند لسانی آہنگ چھہ نہ اکۍ سے مشینی وزنس پیٹھ ٲستھ تہِ کنے۔ یمن غزلن ہند انفرادی لسانی آہنگ بناونس منز ییتہِ یہندس مخصوص لفظیاتس، لفظن تہ تمن ہنزن آوازن ہندس دروبستس تہ مخصوص لہجس دخل چھہ تتہِ چھہ کنہِ حدس تام اتھ منز ردیف قافیہ تہِ مدد گار سپدان۔ امہِ علاوہ وچھو شوق سندین شعرن منز واقعاتی فعلن ہند ورتاو تہ اتھ مقابلہ رفیق راز نین شعرن منز واقعاتی فعلن نش احتراز، تہ کامل سندین شعرن منز شرطیہ فعل۔ یم سٲری لسانی پہلو چھہِ شعرک مخصوص آہنگ تعمیر کرنس منز مدد کران۔ وۅنۍ وچھون کاملنے بیاکھ غزل یس اتھۍ مفاعلن فعلاتن مفاعلن فعلن کس وزنس پیٹھ وننہ چھہ آمت:

یہ نار کیتھ چھہ الہی شہر شہر چھہ دزاں
عقل گمژ چھیہ دہے دہ اگر مگر چھہ دزاں
دزاں چھہِ بام پیواں ژینۍ ہیواں الاو کٹھین
گرس گرس چھیہ پلاں ژھٹھ نفر نفر چھہ دزاں

امہِ غزلک لسانی آہنگ چھہ یک دم کاملنہِ پتمہِ غزلہ نش مختلف تہ یتھے پاٹھۍ راز تہ شوق نہِ غزلہ نش تہِ۔ نکتہ چھہ یہ زِ وزنچ مشینی نوعیت (یۅس پریتھ قسمہ کہ عروضچ بنیاد چھیہ) چھیہ نہ یتھین غزلن برونہہ کنہِ کانہہ معنی تھاوان۔ یتھین غزلن منز چھہِ مشینی وزنہ بجایہ یمن غزلن ہنز لفظیات، آوازن ہنز دروبست، معنیاتی فضا تہ لہجک آہنگ پرن والۍ سندس ذہنس آوراوان۔ مگر ییلہِ کانہہ شاعر یتھین غزلن ہنز محض تقلید کرنہِ بیہان چھہ، عروض کہ مشینی نوعیتک احساس پیدہ گژھن چھہ لازمی۔ یہ احساس چھہ تیلہِ تہِ سپدان ییلہِ اسۍ رسالن منز اکی لسانی آہنگکۍ تہ لہجکۍ غزل صفحہ پتہ صفحہ وچھان چھہِ۔ یہ احساس چھہ نہ عربی فارسی عروض سے سیتۍ مخصوص بلکہ ہیکہِ یہ کنہِ تہِ عروضس منز ممکن ٲستھ۔ اتھ چھہ نہ صرف عروض کس ورتاوس سیتۍ رشتہ بلکہ لفظیاتس تہ لہجس سیتۍ تہِ۔ مثالہِ پاٹھۍ نمون اسۍ کاملن بنم غزل یس فاعلاتن مفاعلن فعلن کس وزنس پیٹھ چھہ:

نندرِ اندر نندر خراب تہِ کر
با سکوں روز اضطراب تہِ کر
سونچہ سودرکۍ ملر تلکھ ہمراہ
شیچھ یہ باوی دلک حباب تہِ کر 

اتھۍ غزلس پیٹھ ییلہِ راہی ہیو شاعر پنن غزل نہ صرف وزنہ کنۍ تہ قافیہ کنۍ بلکہ لہجہ کنۍ تہِ تقلید کٔرتھ ونان چھہ، یک دم چھہ تکرارک احساس گژھان۔ اگر اتھ آہنگس ساری شاعر یتھے پاٹھۍ پتہ لگن یۅہے احساس گژھہِ عروض کس مشینی احساسس منز تبدیل۔ وچھوکھ راہینۍ شعر:

سودرہ تارس تراں سراب تہِ سر
ٹورۍ اسناہ کراں گلاب تہِ ہر
چانہِ جسمچ سبز سپار پٔرم
میانہِ روحک کرہن عذاب تہِ زر 

نہ صرف چھہ اتھ منز کاملنہِ غزلہ کہ بنیادی لہجک آہنگ برقرار تھاونہ آمت بلکہ چھہ قافیہ تہِ برقرار تھاونہ آمت۔ اتھ غزلس منز چھہ کاملنہِ بییہِ اکہ غزلک ول تہِ ورتاونہ آمت۔ یعنی دوگن قافیہ۔ وچھون سہ غزل تہِ۔

چشمے تلکھ اضطراب ہاوکھ
دم دتھ تہِ کوتاہ حباب تھاوکھ
ماگس اندر تے امار برادی
ژٹۍ ژٹۍ حریرس گلاب چھاوکھ 

میانہِ پیٹھمہِ بحثک مطلب چھہ یہ زِ جان شاعر سندس اتھس منز چھہ نہ عروضک مشینی پاس نظری یوان۔ سہ چھہ پننہِ لہجہ تہ لفظیات چہ انفرادیژ تہ تحرک سیتۍ عروضک سہ پاسے نظرن دور کران۔ کامل، راز تہ شوق سندین غزلن منز چھہ نہ وزنہ کس مشینی نمونس منز کانہہ انحراف کرنہ آمت۔ تمہِ وارے چھہ یمن تریشونی غزلن منز آہنگک تنوع میلان۔ شاعری ہندِ آہنگک تنوع ہیکہِ لسانی انفرادیژ تہ لسانی تنوع علاوہ زحافن ہندِ ذریعہ یا عروضی انحرافو سیتۍ تہِ پیدہ کرنہ یتھ۔ عربی فارسی عروضس منز چھہِ آہنگ زیٹھین ژھۅٹین ہیجلین ہنزِ اکہ خاص ترتیبہِ سیتۍ پیدہ کرنہ یا گنڈنہ یوان۔ لہذا یمن ہنز یہ ترتیب قایم تھاونۍ چھیہ امہِ عروضچ اولین ضرورت۔ تمن عروضن منز ییتہِ عروضچ (آہنگ پیدہ کرنچ) بنیاد ژھۅٹین زیٹھین ہیجلین ہندس ترتیبس پیٹھ چھیہ نہ، تمن منز اگر ہیجلۍ اورہ یور تہِ گژھن کانہہ فرق پییہ نہ۔ مگر یتھ عروضس منز زیٹھین ژھۅٹین ہیجلین ہنز خاص ترتیب ورتاونہ یوان آسہِ، سۅ برقرار تھاونۍ چھیہ ضروری۔ البتہ اکہِ خاص ترتیبہِ سیتۍ پیدہ کرنہ آمت آہنگ برقرار تھٲوتھ رکھہِ ڈلنس چھہِ زحافہ ورتاو ونان۔ یعنی کینژن جاین چھہ تنوع پیدہ کرنہ کہ غرضہ ترتیبہ منز تبدیلی کرنک اجازت۔ پریتھ کانہہ شاعر چھہ نہ آہنگن ہند یوت ماہر آسان زِ سہ کرِ نوۍ نوۍ زحافہ ایجاد۔ اوے چھہِ پریتھ بحرس تہ وزنس عروضی کتابن منز کینژن مخصوص زحافن ہنز نشاندہی وتھ ہاونہ خاطرہ کرنہ آمژ تاکہ مجبوریو، مقصدو علاوہ ییہِ مختلف زبانن ہندِ آہنگک تہِ خیال تھاونہ۔ زحافہ ورتاوہ سیتۍ چھہِ نہ صرف اکہ وزنہ پیٹھہ نوۍ وزن بناونہ یوان بلکہ چھہ اکۍ سے وزنس منز آہنگک تنوع تہِ پیدہ کرنہ یوان۔ امہِ قسمک زحافہ ورتاو چھہِ نہ سانۍ شاعر عروض نہ زاننہ کنۍ کٔرتھ ہیکان۔ یمن زحافہ تبدیلین ہند اجازت چھہ زیادہ تر عروض تہ ضربس تام محدود تاکہ وزنک کلہم آہنگ روزِ برقرار۔ مگر کینژن وزنن منز ہیکہِ امہ قسمچ تبدیلی باقی ارکانن منز تہِ سپدتھ تہ آہنگس پییہ نہ تنوع علاوہ کانہہ فرق۔ مثلا کاملن یہ شعر:

ڈیر چھی سخنن گمتۍ نیر تہ بیہہ آبس منز
فاعلاتن فاعلاتن فعلاتن فعلن
معنہ حرفن چھہ ہراں تیزاں چھیہ تیہہ آبس منز
فاعلاتن فعلاتن فاعلاتن فعلن

وچھو اتھ منز کتھہ پاٹھۍ چھہِ فاعلاتن تہ فعلاتن (بہ تحریک عین) آزادی سان اکھ اکہ سیتۍ بدلاونہ آمتۍ۔ امہ تبدیلی سیتۍ یودوے دۅن مصرعن ہندس آہنگس منز تنوع پیدہ گومت چھہ مگر کنہِ قسمک اختلاف یا بد آہنگی چھیہ نہ پیدہ گمژ۔ ضرورت چھیہ یہ زِ نہ صرف ین جایز زحافہ کھلہ پاٹھۍ ورتاونہ بلکہ گژھن تتھۍ انحراف تہِ کرنہ ینۍ یمن ہند اجازت روایتی عروضی اصول چھہ نہ دوان مگر یم یا تہ زبانۍ ہندِ مخصوص آہنگہ کنۍ یا کنہِ معنوی مجبوری تہ تنوع کہ غرضہ کنۍ مستحسن آسن۔ یژھہ تبدیلی کرنہ خاطرہ چھیہ دۅشونی عروضس تہ زبانۍ ہندس آہنگس پیٹھ نظر آسنۍ ضروری۔ شاید چھہ یتھنے انحرافن مدنظر "کاشر شاعری تہ وزنک صورت حال” مقالک مصنف ونان:

’’عربی فارسی عروضہ کس محض مشینی ظاہرس آویزہ روزنس چھہ نتیجہ نیران زِ اسۍ چھہِ بعضے رتین کیو بڈین شاعرن ہندۍ کینہہ شعر وچھتھ پریشان ہوۍ گژھان زِ تمن کُس تُل کرو یا میژ ہیمو؟‘‘ (ص ۵۳)

امہِ اقتباسہ پتے چھہ سہ کینژن شعرن ہنزہ مثالہ دوان یمن منز رسول میرن یہ شعر تہِ چھہ۔

شہمارۍ زلفو نال وولہم رود افسانے
وۅنۍ ونتہ کم افسانہ پرے بال مرایو

اگر یہ مفعول مفاعیل مفاعیل فعولن وزنس پیٹھ نمون، یہ چھہ نہ مشینی طور پورہ وتران بلکہ چھہ کینژن جاین پھٹان۔ مگر اتھ منز چھیہ نہ پھٹنہ باوجود کانہہ بد آہنگی محسوس سپدان۔ یمیک وجہ اکھ الگ بحث چھہ تہ ییتہِ نس ونو اسۍ زِ یہ شعر چھہ یتھ کتھہِ کن خوب اشارہ کران زِ رکھہِ ڈلن یا زحافہ ورتاون یا ایجاد کرن کتھہ پاٹھۍ ہیکہِ آہنگ کہ لحاظہ مستحسن ٲستھ۔ شعر پھٹنہ باوجود چھہ نہ آہنگ مجروح گژھان۔ کانہہ لفظ ہیکہِ نہ اورہ یور ڈلتھ۔ کانہہ تصحیح چھیہ نہ ممکن۔ یہ شعر چھہ لفظن ہنزِ چستی تہ بندشہِ ہنز بہترین مثال پیش کران۔ اتھ برعکس نیون راہی ین یہ شعر:

نہ ابتدا نہ پریتھنپا نہ انتہا باسی
وزکھ اگر ٹھینوہ روس زانہہ میہ ونۍ زِ کیا باسی

یمن دۅشونی مصرعن منز چھہ نہ وزنس منز کانہہ انحراف کرنہ آمت تہ نہ چھہ کانہہ زحافہ ورتاونہ آمت۔ مگر وزنہ کنۍ دۅشوے مصرعہ مشینی طور برابر ٲستھ تہِ ہیکون نہ گۅڈنیک مصرعہ دویمس مصرعس ہم آہنگ مٲنتھ۔ بلکہ چھہ دویم مصرعہ کنہِ حدس تام بد آہنگ، تکیازِ اتھ منز چھیہ گۅڈنکس مصرعس مقابلہ لفظن ہنز بھرمار۔ دویم وجہ یہ زِ گۅڈنکہِ مصرعک آہنگ قایم تھاونہ خاطرہ چھہ دویم مصرعہ سیٹھا وُژھہِ تہ تیز رفتاری سان پرُن پیوان ییلہ زن شعر امہِ جلدی ہند کانہہ معنوی مطالبہ چھہ نہ کران بلکہ چھہ یہ مصرعہ کنہِ تھکہ وراے پشہ پیٹھہ شین والنس یا بیگارۍ نکھہ والنس برابر۔ راہی نہِ امی غزلک بیاکھ شعر تہِ وچھون:

بہ چھس نہ ونہِ تہِ سۅ کنۍ شیچھ تسنز ہیکاں مۅلوتھ
ژہ کیا کرکھ اگر ابلیس خیر خواہ باسی

اتھ شعرس منز تہِ چھہ گۅڈنیک مصرعہ مشینی طور وزنس برابر ٲستھ دویمہِ مصرعہ کہ آہنگہ نش زیٹھان۔ یم مصرعہ تہِ چھہِ نہ مکمل طور ہم آہنگ۔ راہینۍ یم شعر چھہِ وزن مشینی طور ورتاونک بیاکھ پہلو پیش کران۔ یعنی شعرک لسانی آہنگ اوک طرف ترٲوتھ، وزنہ برابری کرنۍ۔ یمہِ قسمچ خالص وزنہ برابری یمن شعرن منز میلان چھیہ سۅ چھیہ نہ لسانی آہنگک رت نمونہ پیش کران۔ ممکن چھہ یہ آسہِ راہی سنز شعوری کوشش مگر یہ ہیکہِ اظہارس یعنی لفظ وبیانس پیٹھ دسترس نہ آسنک نتیجہ تہِ ٲستھ۔ یوت تام نہ شاعرس یہ دسترس حاصل سپدِ توت تام چھہ سہ عروض کہ جبرکۍ بداد دوان۔ یمہِ ساتہ مولانا رومی ونان چھہ : شعر می گویم بہ از قند و نبات/من ندانم فاعلاتن فاعلات سہ چھہ اتھۍ مشینی مزازس کن اشارہ کران۔ مولانا چھہ نہ عروضکۍ بداد دوان یا امہِ کہ جبرچ کتھ کران بلکہ چھہ سہ یہ ونان زِ بہ چھس قندہ تہ نباتکۍ پاٹھۍ میٹھۍ شعر ونان یعنی پر آہنگ شعر۔ سہ چھہ نہ یم میٹھۍ شعر عروض نیبر نیرتھ یا عروض کین اصولن تجاوز کٔرتھ ونان بلکہ چھہ مولاناہن عربی فارسی عروض پریتھ پابندی سان ورتومت۔ پابندی سانے اوت نہ بلکہ جایز زحافہ ورتٲوتھ تنوع سان تہِ۔ تسند مقصد چھہ یہ زِ سہ چھہ نہ فاعلاتن فاعلاتنچ مشینی ضابطہ بندی یا وزنہ برابری نظرِ تل تھٲوتھ شعر ونان۔ یعنی سہ چھہ نہ زبردستی کٔرتھ لفظن منز وزنہ برابری کران۔ اگر تہِ کرنہ ییہِ تیلہ گژھن بد آہنگ شعر موزون یمن ہنز مثال اسہِ راہی سندین پیٹھمین شعرن منز وچھ۔ "من ندانم” گوو نہ "بہ زانہ نہ”۔ سہ گوو لفظی معنی، مگر یہ چھہ شعر۔ مولانا اوس وارہ کارہ عروض زانان تہ ورتاوان۔ امیک مطلب گوو سہ چھہ لفظن ہندس میچھرس یعنی لسانی آہنگس اہمیت دوان، فاعلاتن فاعلات کس ژھرس مشینی گردانس نہ۔ راہینۍ شعر اگر وزنہ کس مشینی گردانس پیٹھ پورہ وتران چھہِ، تاہم چھہِ نہ تم زبانۍ تہ آہنگک میچھر پیدہ کٔرتھ ہیکان یمچ کتھ مولانا پیٹھمس شعرس منز کران چھہ۔