قدیم شعری ہیت

book

واکھ یا شروک چھہ ژورن مصرعن ہنز اکھ قدیم شعری ہیت یۅس نہ صرف سانہِ کشیرِ منز بلکہ واریاہن قومن مثلا ہندوستان، افغانستان، چین، ایران بیترِ ملکن منز ورتاونہ یوان ٲس۔

یہ چھیہ معیاری ادبی ہیت، یہ چھیہ نہ لکہ ادبچ ہیت۔ لکہ ادبچ ہیت چھیہ وژن۔ شیخ العالم چھہ ژ‎ۅن مصرعن ہنز یہ ہیت لل دیدِ مقابلہ سیٹھا پابندی سان ورتاوان۔ امس چھیہ تمام شروکین منز مصرعن ہنز اکھ گنڈتھ قافیہ ترتیب، یۅس اسۍ /اب ا ب/ سیتۍ پرکٹ کٔرتھ ہیکون۔ لل دیدِ ہندس واکھس منز چھیہ قافیہ بندی ہنز ترتیب بدلان۔ امہ رنگہ ییتہ لل واکھن منز تنوع میلان چھہ، شیخہ شروکین منز چھہ ہشر۔ مگر شیخ العالم چھہ قافیہ بندی بدلہ شروکۍ چہ ہیٔژ منز تنوعچ وتھ کڈان۔ سہ چھہ شروکہ کین عمومی طور گنڈتھ ژورن مصرعن منز اتی دۅن تہ اتی ژۅن مصرعن ہند ہریر کٔرتھ اتھ ترین تہ ژۅن شعرن تام واتناوان مگر قافیہ بندی منز چھہ نہ کانہہ تبدیلی انان۔ گۅڈنیک چھہ تریمس، دویم چھہ ژورمس، پانژم چھہ ستمس تہ شییم چھہ ٲٹھمس مصرعس سیتۍ برابر قافیہ بند۔

امین کامل چھہ نور نامس منز ونان "یہ چھہ ہاوان زِ حضرت شیخس تام چھیہ اتھ صنفس اندر تبدیلی سپزمژ۔” مگر یہ چھیہ نہ صنفچ کانہہ ارتقایی تبدیلی بلکہ اتھ ہیتس وسعت دنہ خاطرہ شیخ العالم سند پنن اکھ تجربہ۔ اگر یہ عام پاٹھۍ ہیتچ ارتقایی تبدیلی آسہِ ہے تیلہِ آسہِ ہے یہ شیخ العالمس سیتۍ سیتۍ تہندین ژاٹن ہندس ورتاوس منز۔ یا تس برونہہ تہِ، یُس نہ ثابت ہیکہِ گژھتھ۔

بیاکھ تجربہ یُس شیخ العالمس نش میلان چھہ، سہ چھہ لکہ شاعری ہنز ہیت وژن ورتاونک تجربہ۔ امین کامل چھہ یمن”مسلسل شروکۍ” ؤنتھ وژنکۍ "گۅڈنکۍ نمونہ” قرار دوان۔ مگر میہ چھہ باسان وژن آسہِ ہے امہ وقتہ تہِ لکہ ادبس منز رایج۔ شیخ العام چھہ اتھ پننہ ادبی شاعری منز ورتاونک تجربہ کران۔

کُس گوو توت

th_Charari Shareif

کُس گوو توت تہ کمیو ڈیوٹھے
توت نتھ وٲتتھ کیتۍ گیہ پتھ
یمۍ یوت پنن پانا ژیوٹھے
تمۍ تیژ لٔبے لیٹھے وتھ

شیخ العالم

شیخہ شروکین پیٹھ کتھ کران چھہ سٲری پشہ پیٹھہ زن شین والان۔ یہ چھہ یمن تیوت سہل تہ برونہہ کنیک معاملہ باسان زِ کُنہ لفظس پیٹھ غور کرنہ خاطرہ چھہِ نہ کٲنسہ ہندۍ قدم رکان۔

تور کُس ووت تہ سہ کمۍ وچھ۔ یہ چھہ اتھ پیٹھہ کنیک معنی۔ توت یعنی تور، تتھ جایہ، تتھ طرفس۔ مگر توت گوو تتُن تہِ، تیزُن تہِ، سخت گرم گژھن تہِ۔ توت فقیر، توت موت! یہ معنی ہیکون نہ نظر انداز کٔرتھ۔ توت گژھن گوو بخار کھسُن تہِ۔ امہ لحاظہ کٔرو دویمس مصرعس پیٹھ غور۔ "کیتۍ گیہ پتھ”۔ پتھ گژھن گوو بیمار سنز حالت خراب گژھنۍ، ابتر گژھنۍ۔ پتھ گژھن گوو وتی ڈۅکن تہِ۔ منزلس نہ واتن۔ ہمت ہارنۍ۔

ڈینٹھن گوو نظرِ یُن، اچھن منز یُن۔ کمیو ڈیونٹھے؟ کس آو سہ بوزنہ؟ آفتابہ ہیکیا کانہہ وچھتھ؟ آفتاب ہیکیا کانسہِ اچھن منز یِتھ؟ آفتاب کس تژرس ہیکہِ کانہہ توتے ژٲلتھ۔ تریمس مصرعس منز چھیہ پان ژیٹنچ کتھ۔ پان ژیٹن گوو پننس پانس ژنجہِ دنہِ، پنن سینہ دگن، مار دین۔ پان کُس ژیٹہِ ؟ سے یُس تتیومت آسہِ ، یُس سیٹھا تیزیومت آسہِ۔ یُس پان ژیٹہِ سہ تتہِ، یُس تتیومت آسہِ سہ ژیٹہِ پان۔ پان ژیٹن گوو نہ پان ژٹن۔ یہ چھیہ نہ محنتچ یا ریاضتچ کتھ۔ یہ چھیہ پنن پان گالنچ کتھ۔ پنن پان، پنن نفس یوتاہ گالنہ، مارنہ ییہِ، تیوتاہ ژھۅٹہِ وتھ۔ ژھوٹ وتھ تتھ خاص مقامس تام۔

زیٹھ وتھ آسنہ کنۍ تہِ ہیکہِ کانہہ پتھ گژھتھ۔

Die unto Me so I can live in thee! — Jesus

شیخ العالم چھہ اکھ ا کھ لفظ تولۍ تولۍ ورتاوان تتھہ پاٹھۍ زن یم لفظ امی بنٲومتۍ چھہِ۔

اتھ شروکس منز چھہ /ت/ آوازِ ہند سیٹھا غلبہ، مخولہ چھہ نہ، ژۅن مصرعن منز چھہ 13 / ت/ ذات الہی کہ آفتابک تژر تہ تیزر باوان۔

کُنیرے بوزکھ

shk

کُنیرے بوزکھ کُنہِ نو روزکھ
امۍ کنرن کوتاہ دیت جلاو
عقل تہ فکر تور کوت سوزکھ
کمۍ مالہِ چیتھ ہیوک سہ دریاو

شیخ العالم

کُنیر گوو توحید۔ خدایہ سنز ذات چھیہ لاشریک۔ کُنۍ۔ بوزُن گوو کنہِ چیزس کن تھاون۔ کنہِ چیزس کن دھیان دین۔ کانہہ چیز سمجھن تہ زانن۔ بوزن گوو حساب لگاون تہِ۔ روزُن گوو کنہِ جایہ ٹھہرن، قرار کرن۔ "کُنیرے بوزکھ” چھہ شرطیہ فقرہ۔ اکھ فرض کرنہ آمت صورت حال۔ اگر تہِ سپدِ، اگر خدایہ سنز ذات سمجھنۍ ہیکھ، زاننچ کوشش کرکھ، کنہِ روزکھ نہ۔ کنہِ نہ روزن گوو وحشت طاری گژھن تہ کنہِ جایہ نہ قرار لبُن۔ بیاکھ معنی گوس پنن آسُنے راوُن۔ جلاو دین گوو نپہ نپہ کرن، چمکن۔ نون نیرُن۔ یعنی امہ کنرہ منزہ کوتاہ، لانہایت دراو نون۔ عقل چھیہ انسان سنز زان حاصل کرنچ صلاحیت یمچ بنیاد پانژن حیسن پیٹھ چھیہ تہ فکر چھیہ امہ صلاحتچ عمل۔ "توت کوت سوزکھ” گوو عقلہ ہند توت نہ واتن، رسایی نہ حاصل گژھنۍ۔ وتی ژھۅکن۔ تریم مصرعک عقل واتہِ نہ توت تام چھہ دۅشونی کتھن پیٹھ لاگو۔ عقل ہییکہِ نہ کنرس تام وٲتتھ تہ توت تام تہِ نہ یہ امۍ کنرن بود چھہ کورمت، لانہایت جلاو۔ لفظ "تور ” چھہ قابل غور۔ تور کوت سوزکھ یعنی کانہہ وسیلہ چھہ نہ تہ بییہ چھیہ نہ سۅ کانہہ مخصوص جاے یوت کانہہ چیز سوزنہ ییہِ۔ بوزکھ لفظہ کہ تعلقہ ونو زِ کنرس حساب لگاون چھہ ناممکن۔ اسۍ ہیکو نہ امہ کس جلاوس تہِ حساب لٲگتھ۔ خدا (توحید) سمجھن تہ زانن چھہ نہ انسانہ سندِ خاطرہ ممکن۔ ٲخری مصرعہ چھہ اتھ مابعدالطبیاتی خیالس اکہ مثالہِ سیتۍ محبتہ سان (مالہِ) سمجھاونچ کوشش کران۔ یہ چھہ ضرب المثل۔ دریاو چینک چھہ نہ سوالے۔ پیٹھہ کُس دریاو؟ "سہ دریاو” یُس سانہِ دریاوہ تہِ زیادے دریاو چھہ تکیازِ دریاو چھہ لگارتار، ژھینہ روس، ہمیشہ وسوُن۔ یُس چیۍ چیۍ تہِ ختم گژھہِ نہ ۔ سہ روزِ تتۍ تیتھے۔ سہ چھہ یہ دپۍ زِ تہِ ازلی ابدی۔

یہ شروک چھہ توحید وجودی یس کن اشارہ۔ یمہ مطابق خدایہ سندِ مفرد ذاتہ تہ وجودہ ورٲے بییہ کانہہ/کینہہ موجود چھہ نہ۔

کُنرس وون میہ خدایہ سنز ذات، اسۍ ہیکو اتھ صرف کُنیر تہِ ؤنتھ یا ونوس "کینہہ نہ”۔

اتھ شروکس منز چھہ /ک/ آوازِ ہند تکرار۔ گۅڈنکین دۅن مصرعن منز چھہ/ن/ آوازِ ہند تہِ تکرار یُس قابل توجہ چھہ۔ یم زہ آوازہ رٔلتھ چھہ لفظ "کُن” تہِ بنان۔ یم آوازہ چھیہ کُنرہ چہ تہِ کلیدی آوازہ۔