دشمن تہِ گلا میون

azad

اتھ کن اوس نہ کٲنسہِ ظۅن زِ عبدالاحد آزادن چھہِ سیٹھا وزن ورتٲوۍ متۍ۔ مہجورن چھہِ نہ تیتۍ وزن ورتیمتی۔ رسول میرس پتہ چھہ آزاد گۅڈنیک شاعر یمس نش اسہِ عروضی تنوع میلان چھہ۔ بہ اوسس اتھ پیٹھ لیکھن یژھان تہ فونس پیٹھ اوسس امیک کٲنسہِ کٲنسہِ نش ذکر کران۔ پتہ نیو رفیق رازن آزاد سندین وزنن پیٹھ اکھ مضمون لیکھتھ۔ مگر آزاد نس وزنہ ورتاوس متعلق چھیہ بییہ تہِ واریاہ کتھہ یم نہ راز سندس مضمونس منز چھیہ۔ ییتہِ نس چھیہ نہ تمن ہنز کتھ، البتہ چھس بہ ہمیشہ یہ سوچان زِ یہ آزاد کوتاہ ذہین چھہ اوسمت۔  کینہہ شعر یم میہ پسند چھہِ چھہِ پیش:

جہلہ کُے پردہ ژٹن والۍ یوان کالہ پگاہ
علمہ کُے پردہ ژٹن والۍ یوان یژکالۍ

یہ شعر ونن وول چھہ نہ معمولی انسان۔ امس کوت پیٹھ چھیہ نظر ٲسمژ۔ جہلک پردہ ژٹن چھہ آسان، علمک پردہ ژٹن چھہ نہ آسان۔ یہ پردہ ژٹن وول گژھہِ پزۍ پاٹھۍ تمی سندی کتھہِ پیغمبرِ خدا آسن۔

یہے کتھ چھن بییہ یتھہ پاٹھۍ ونمژ:

تہِ زانن تم یمو عبرت امیک روٹ
چھہ اتھ گاشس اندر کوتاہ انہِ گوٹ

٭٭٭٭

وچھو شعر:

کمہِ ساعتہ کٔڈتھ میانۍ ہوس میانۍ تمنا
سورے ژہ زانکھ پانہ بے پروایہ ونے کیا

٭٭٭٭

شہریار سند اکھ شعر چھہ یُس سیٹھا مشہور گوو:

ہربار پلٹتے ہوئے گھر کو یہی سوچا
اے کاش کسی لمبے سفر کو گئے ہوتے

وچھو آزاد کیا ونان:

پردہ ژٹتھ نیرہ ہا دردہ نین پھیرہ ہا
تس تہ میہ تانۍ منزلاہ دور وتھا آسہہے

٭٭٭٭

وچھو شعر:

تس تہِ گمتۍ یم ستم آسہِ ہنے زیادہ کم
ضایع گژھان دمبدم میون صدا آسہہے

٭٭٭٭

وچھ میہ خدا زانونۍ ساسہ بدی عقلمند
پان پنن زانہ وُن کانہہ تہِ اکھ آسہِ ہے

٭٭٭٭

بہ منگہ پننس  خداے پاکس بروز محشر الگ مکانا
بہن تہ کھیون چیون شونگن تہ عشرت اگر یتُے یوت چھہ جنتس منز

٭٭٭٭

سیٹھا زٲنتھ میہ زونم کینہہ نہ زونم
لٔبتھ تیروکماں رووم نشانہ

٭٭٭٭

ودنس میٲنس اسونۍ ترایے
غم سے منز چھہ شادیانے میون

٭٭٭

غالب ونان
دے اور ہی دل ان کو۔۔۔

آزاد ونان

ونان یم دورِ چھم جاہل
دتکھ انسانہ سند ہیو دل
دہکھ نے اچھ دتکھ ٹٲری
بہ نو ذرہ عشقہ بیماری
یاتہ وچھن نتہ تھاون اچھے ؤٹتھ۔

٭٭٭٭

یہ عالم حسرتک خارا چھہ میٲنس گلشنس اندر
سہ عالم وحشتک داغا چھہ میٲنس دامنس اندر

٭٭٭٭

غلامی منز تہِ آزادس چھیہ آزادی خیالن منز
ییس ما ژکھ خدواندس پییس ما دین حساب ٲخر

٭٭٭٭

یہ وچھو شعر۔ ہے ہے کیا کتھ اوس ونان کتھ وقتس:

چھس دوستی ہند دوس یہ دشمن میہ کریم کیا
یتھ دوستی ہنزِ وارِ منز دشمن تہِ گلا میون

کاش علامہ اقبالن تہِ آسہ ہن یژھے کتھہ کرِ مژہ۔ کاش آزادس نش فن زیادہ پہن آسن اوسمت، پتہ تسندۍ خیال!  آزاد نہِ شاعری منز چھہ وحدت عالم انسانی، یمیک نہ کشیرِ منز کانہہ تصور ہیکہِ کٔرتھ۔  عام طور چھہ لوکھ سوچان زِ آزاد اوس مذہب بیزار یا خدا بیزار مگر تمۍ سنزِ شاعری منز چھیہ نہ تژھ کانہہ کتھ۔ تسند کلام چھہ بغور پرنچ ضرورت۔

وحدت حق اوس کُنرک ابتدا
وحدت انسان کُنرک انتہا

واریاہ دوست ما دپن زِ یہ چھہ اکھ خالص بیان تہ یہ ہیکہِ نہ شاعری بٔنتھ۔ تم چھہِ اکہ بجہ غلط فہمی ہندۍ شکار۔ پریتھ شعر چھہ نہ علامت تہ استعارہ تہ پیکر آسان۔ شاعری چھیہ ذہانت تہ فطانت تہِ۔ اکھ غیر معمولی بیان تہِ۔ اکس غیر معمولی اندازس منز یتھہ پاٹھۍ اکھ عام کتھ وننہ ییہِ، تتھے پاٹھۍ ہیکہِ عام اندازس منز غیر معمولی کتھ وننہ یِتھ۔ آزاد سند یہ شعر چھہ بظاہر سادہ مگر اتھ منز یۅس کتھ چھیہ وننہ آمژ سۅ چھیہ اکس فلسفس تہ اعتقادس کن اشارہ کٔرتھ تمیک اکھ غیر معمولی کونہ گاشراوان۔ غالب سندِ یمہ شعرکۍ پاٹھۍ چھہِ کہیا شعر یم سادہ بیان چھہِ مگر یمن منز اکھ ڈرامایی صورت حال پیدہ کرنہ چھہ آمت:

ہر ایک بات پہ کہتے ہو تم کہ تو کیا ہے
تم ہی کہو کہ یہ انداز گفتگو کیا ہے

گویا اکھ کتھ یا خیال غیر معمولی یا دلچسپ اندازس منز بیان کرنہ علاوہ چھہ شاعری ہند پسندیدہ آوریار غیر معمولی تہ دلچسپ کتھن ہند بیان رود مت۔ امی منزہ چھیہ غزلچ مضمون آرایی تہ خیال بندی بیترِ درامژ۔ آزادنہِ شاعری منز چھہِ تتھۍ خیال تہ تژھہ کتھہ میلان یم سیٹھا دلچسپ چھیہ تہ عام کاشرۍ سندِ خاطرہ بہرحال غیر معمولی تہِ چھیہ۔

بییہ چھیہ بیاکھ کتھ۔ شعری شخصیت تہ شعری بیانیہ چھیہ شاعر سنز کلہم شاعری آسان۔ مہجور اگر اسۍ الگ الگ شعرن مدنظر مۅلوتھ ہیکون، مگر آزاد سند شعری مۅل چھہ تسنزِ کلہم شاعری ہند نتیجہ۔ آزادن کرۍ واریاہ شاعر متاثر یمن منز مہجور تہِ چھہ حالانکہ آزاد اوس تمس دوست علاوہ وۅستاد تہِ تصور کران۔ جدید شاعرن منز چھہ تسند اثر ساروے کھوتہ زیادہ امین کاملس منز درینٹھۍ یوان۔ آزاد چھہ ترقی پسند فلسفہ سیتۍ متاثر گومت مگر تسنزِ شاعری منز چھہ امہ فلسفہ کھوتہ زیادہ انسان پسندی تہ وحدت عالم انسانی یک جذیہ زیادہ کارفرما۔ تمۍ سنز نظر چھیہ تتھ کُنرس پیٹھ یُس انسان سندِ وجودک انتہا چھہ۔

٭٭٭٭

ننۍ راونے آیوس کُنیر چون گنرس منز
شترن تہ مترن زہرہ کھوتہ ٹیوٹھ لوگ یہ شکر میون

٭٭٭٭

اکہ لٹہِ دیت میہ طرحی مشاعرہ خاطرہ اکھ مصرعہ، وچھو پورہ شعر:

وہم ییلہ عادت سپد دوپہس یقین
آسمانن دامنس تل رٔٹ زمین

٭٭٭٭
بیاکھ شعر بوزو:

عقلہِ ییلہِ دلہ کیو حبابو لود خمار
غیب کس پردس اندر نقش و نگار

٭٭٭٭

خارہ خارو سیتۍ سمسارک بساو
پانہ سے کھرۍ لد پنکۍ پاٹھۍ ولنہ آو

٭٭٭٭

وچھو یہ شعر:

کُنے چھہ دفتر کُنے فسانہ مگر وچھتھ گردش زمانہ
بنان آسمان چین کتابن چھیہ آسمانی کتاب دشمن

اکس اکس لفظس چھیہ سننچ ضرورت۔ وچھتھ گردش زمانہ!

٭٭٭٭

دوگنیارن مارۍ کاشرۍ یے
ہیچھناوتکھ کنرُک سوز
یم تہِ گژھہن تارہ ترۍ یے
سوندرۍ یے بوزی میانۍ زار

٭٭٭٭

باغ سون راوہ روو کھرۍ لد گاسو
ینہ پیٹھہ بازۍ گار باغوان آے
تی ہیوچھ عامن تی ہیوچھ خاصو
پانوانۍ کاسو پننۍ نیاے

٭٭٭٭

بستی ین شنیاہ کور ونواسو
لولہ چہ پھلیے ترٲوکھ ہاے
ژور ہوۍ کرۍ یمو خرقو تہ عاصو
پانوانۍ کاسو پننی نیاے

٭٭٭٭

چھہ پیومت راتہ کریلن راتہ موغلن غم تہ ماتم کیا
یہندے عیشہ باپتھ نیرِ ہے نا آفتاب ٲخر

٭٭٭٭

ٲخرس پیٹھ:

کنہِ وزِ پاوے یاد سۅندرۍ یے
آزادنۍ سخن وری یے
کاشرین مانان چھہ نہ کاشرۍ یے
بٹہ کورۍ مارۍ منز سۅندرۍ یے