عروضی تقلید تہ اجتہاد

image

 

کلامِ مشؔتاق کشمیری

بستی چھُہ کلۍ گنِرا مگر بے سایہ ونے کیا
اڈہ بزۍ کٔرتھ ژُھن سونتھ گریشمنہِ کرایہ ونے کیا

پریتھ پاسہ گٹہ زۆل وۆتھ تہ تُلن واو پھِرُن ڈوٹھ
چھُس گاش ہیتھ اتھۍ منز پکان بے وایہ ونے کیا

تس سیتی چھیم نسبت بہ توے چھس سیٹھا بے باک
عرشک تہ بییہ فرشک چھہ یُس سرمایہ ونے کیا

پاتھل تہ نب دۅشوے چھہِ خلیلس کران آلو
نمرود یمہ وقتکۍ چھہِ نوِ نوِ ترایہ ونے کیا

مۅکھ فطرتک تابندہ درخشان سیٹھا جان
تَمہ نوو تھَن ژُھنتھن ژیہ کٔرتھ ہایہ ونے کیا

یتھ کایناتس ٲس چانی براندہ کنۍ استان
چھیۍ کھوژناوان از ژھرے گگرایہ ونے کیا

کُن کفرکێن کریہنێن اتھن منز مفتیو اسلام
دِلِہ منز چییکھ اتھ سوداہس پیٹھ چایہ ونے کیا

یمہِ دینہ خاطرہ کرۍ صحابو ٹاٹھۍ زو قربان
کُن وعظ خوانو سرۆگ تہ ہیژ ہس لایہ ونے کیا

مشؔتاق میہ وچھمکھ ژہ دۅہے سوزِ جگر ہیتھ
ناحق کران بدنام چھی پریتھ شایہ ونے کیا

 

تقلید

ہزج بحرک اکھ وزن چھہ مفعول مفاعیل مفاعیل فعولن۔

اتھ وزنس چھہ ونان مثمن یعنی 8۔ اتھ وزنس منز چھہِ پورہ شعرس منز 8 رکن آسان۔ فی مصرعہ 4۔ یم 4 رکن چھہِ یم: مفعول (1) مفاعیل (2) مفاعیل (3) فعولن (4)

یم ژۅشوے رکن چھہ امہ بحرہ کہ سالم رکن (مفاعیلن) منزہ مختلف زحافو کنۍ درامتۍ۔

مثمن زیچھرک (یعنی پورہ شعرس منز 8 رکن، اکس مصرعس منز 4) سالم وزن چھہ:

مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن

اتھ مفاعیلن رکنس چھہِ یم زحافہ بنان:

مفعول چھہ خرب زحافہ لاگو کٔرتھ بنان:  مفاعیلن > مفعول

مفاعیل چھہ کف زحافہ لاگو کٔرتھ بنان:  مفاعیلن > مفاعیل

فعولن چھہ حذف زحافہ لاگو کٔرتھ بنان: مفاعیلن > فعولن

(کتھہ چھہِ یم زحافہ بنان تمہ خاطرہ پٔرو کانہہ عروضی کتاب۔)

اصول چھہ گۅڈنیک رکن ہیکہِ صرف مفعول بٔنتھ (مفاعیلن > مفعول)، دویم تہ تریم رکن ہیکن صرف مفاعیل (مفاعیلن > مفاعیل) بٔنتھ، تہ ٲخری رکن ہیکہِ فعولن بٔنتھ (مفاعیلن > فعولن)۔ آخری رکنس پیٹھ چھیہ کینہہ آزادی دنہ آمژہ۔ تتھ پیٹھ چھیہ نہ ییتہ نس کتھ ضروری۔

یۆہے اصول چھہ اتھ وزنس مفعول مفاعیل مفاعیل فعولن منز کارگر۔

اتھ وزنس چھہ پورہ ناو ہزج مثمن اخرب مکفوف محذوف

یعنی وزن چھہ ہزجک، رکن چھس 8 (پورہ شعرس منز)، مصرعک گۅڈنیک رکن چھہ خرب زحافہ (اخرب)، دۆیم تہ تریم رکن چھہِ کف زحافہ (مکفوف) تہ ژورم چھہ حذف زحافہ (محذوف) بنیومت۔

کتابی عروض والین چھہ یُتے پتاہ تکیازِ کتابن منز چھہ یتے لیکھتھ۔
___

 

اجتہاد

ہزج مثمن اخرب مکفوف محذوف

پکیو وۅنۍ وچھو اتھ ناوس سیتۍ کیا تعلق چھہ اتھ غزلس۔

ہزج مثمن ۔ فرض کرو زِ یہ وزن چھہ ہزج بحرک تہ وزن چھس مثمن (8 رکن)۔ یہ ثابت کرنہ خاطرہ کرو اسۍ اتھ غزلس تقطیع۔

اخرب مکفوف محذوف ۔ یہ چھہ امہ بحرک اکھ عام مثمن وزن۔ آہنگ تلہ چھہ باسان زِ اتھ غزلس منز چھہ یۆہے وزن ورتاونہ آمت۔ چلو تقطیع کرو، وچھو سون تُک چھا صحیح۔

تمام مصرعن منز چھہِ گۅڈنکہ رکنہ چہ جایہ ساری لفظ اتھ وزنس پیٹھ کنہِ سقمہ ورٲے برابر یوان۔ مبارک، اکھ قدم کۆر اسہِ طے۔

گۅڈنیک رکن چھہ ہندسن ہنزِ زبانۍ منز 2+2+1 (یعنی 2 آوازہ، 2 آوازہ، 1 آواز)

مثلا:
"بستی چھہ” لفظن ہنز تقطیع: بس (2)+ تی (2)+ چ (1) ۔۔ (مفعول)
"چھہ” کیازِ لیۆکھ میہ صرف چ؟  ژھۅچہ آوازہ (مثلا ییتہِ نس پیش) یمن اعراب ونان چھہِ تہ ھ چھہِ نہ آوازن ہندس حساب کتابس منز مجرا یوان۔

گۅڈنیک رکن آو اسہِ مفعول (اخرب) برابر۔ دۆیم تہ تریم رکن گژھہِ مفاعیل یُن۔ یعنی ہندسن ہندِ مطابق 1+2+2+1

تمام غزلس منز چھہ دۆیمہِ رکنہ چہ جایہ صرف اکس مصرعس منز مفاعیل یوان۔

مشتاق میہ وچھمکھ ژہ

مشتاق 2+2+1 (مفعول) میہ وچھکمھ ژہ 1+2+2+1 (مفاعیل)

تریمہِ رکنہ چہ جایہ چھہ 18 ہو مصرعو منزہ صرف 6 مصرعن منز مفاعیل یوان۔ (تقطیع کرو پانے)

باقی تمام مصرعن منز چھہ دویمہ تہ تریمہ رکنہ چہ جایہ  1+2+2+1 بدلہ 2+2+2+1 یوان۔ لہذا ہیکو اسۍ ؤنتھ زِ یہ غزل چھہ یمن جاین ہزج مثمن اخرب مکفوف محذوف مطابق پھٹان۔ ممکن چھہ یہ ما آسہِ بییہ کنہِ بحرہ کس کنہِ وزنس منز (مثلا مستفعلن مستفعلن بیترِ)۔ بییہ کُنہِ بحرہ کس کُنہِ وزنس کن گژھنہ برنوہہ کرو بییس کتھہِ پیٹھ غور۔ ییلہ اسۍ یہ غزل پران چھہِ تقطیع کرنہ کہ ارادہ ورٲے اسہِ چھہ اتھ منز آہنگ ٹھیک ٹھیک باسان۔ کیا وجہ چھہ؟

دۆیمہ تہ تریمہ رکنہ چہ جایہ یُس اسہ ہندسو مطابق اکثر جاین  2+2+2+1 یوان چھہ، سہ کیا چھہ؟ عروضی ارکانو مطابق کتھہ پاٹھۍ ہیکون اسۍ یہ ہندسہ ترتیب لیکھتھ؟ واریاہ طریقہ چھہ۔ یہ ہیکہِ مفعولات ٲستھ۔ مگر مفعولات چھہ نہ ہزج بحرک کانہہ زحافہ مگر تمام عروضی کتابہ چھیہ ہزج بحرہ کس سالم رکنس 2 درجن پیٹھۍ زحافہ دوان یمن منز اکھ مرکب زحاف مفعولان چھہ۔ یہ مفعولان تہِ چھہ  2+2+2+1 ہندسن برابر۔ گۆو اتھ غزلس منز چھہ دۆیمہ تہ تریمہ رکنہ چہ جایہ 7 جاین مفاعیل مزاحف رکن یوان تہ 29 جاین مفعولان مزاحف رکن یوان۔

اگر ساری عروضی مفاعیلن رکنک اکھ مرکب زحافہ مفعولان دوان چھہِ، امیک ورتاو کونہ چھہ امہ بجرہ کس کنہِ وزنس منز؟ یہ چھا صرف امکان کِنہ اتھ پتہ کنہِ چھیہ عربی زبانۍ ہند کانہہ آہنگ اوسمت۔ تہِ ہیکو نہ اسۍ ؤنتھ، التبہ اگر یہ گنجایش موجود چھیہ، یہ زحافہ کیازِ ییہ نہ کاشرس منز اتھ جایہ جایز ماننہ ییلہ زن یہ سٲنس کاشرس آہنگس زیادہ موافق باسان چھہ؟

مفاعیلن چھہ 7 حرفی رکن ماننہ یوان تہ مفعولان تہ چھہ 7 حرفی رکن۔

مفعولان زحافہ چھہ دۅیو زحافو سیتۍ یکوٹہ بدس یوان، امہ کنۍ چھہ مرکب زحاف۔ خرم تہ تسبیغ ۔

وۅنۍ پکو اسۍ ژورمس رکنس کن۔

12 جاین چھہ اتہِ نس عام پاٹھۍ مستعمل مزاحف رکن فعولن یوان۔ 4 جاین چھہ مزاحف رکن مفاعیل یوان یمچ آزادی چھیہ۔ 2 جاین چھہ مرکب مزاحف رکن مفعولان یوان یمچ ٲخری رکن آسنہ کنۍ آزادی گژھہِ آسنۍ۔

میانہِ یمہ تجزیہ کنۍ ہیکون اسۍ یہ وزن یتھہ پاٹھۍ ظاہر کٔرتھ:

ہزج مثمن اخرب مکفوف/اخرم مسبغ محذوف

یمہ تجزیہ پتہ چھیہ نہ میہ کانہہ ضرورت یہ وزن باقی بحرن منز ژھانڈنک، حالانکہ کینہہ وزن چھہ مختلف بحرن منز آہنگہ لحاظہ ہوی۔

یمہ تجزیہ مطابق گوو یہ ثابت زِ یہ غزل چھہ وزنس منز تہ کنہِ جایہ چھہ نہ پھٹان۔ شاعرن چھیہ شاید کوشش کرمژ مفعول مفاعیل مفاعیل مفاعیل فعولن وزنس پیٹھ غزل وننک مگر کاشرۍ آہنگن چھیہ پانے بدل وتھ کڈمژ یمچ گنجایش ہزج بحرس منز گۅڈے موجود چھیہ، بشرطیکہ عروضی کتابہ طاقچس پیٹھ تھٲوتھ ییہ کتھ کرنہ۔

ٲخرس پیٹھ مشتاق کشیمری سنزِ شاعری پیٹھ۔ میون اکھ دوست وۆتھ "کشیرِ چھہِ زے شاعر پیدہ کرۍ متۍ۔ اکھ مشتاق کشیمری” اگر نہ تمی امہ پتہ امین کامل سند ناو ہیۆتمت آسہِ ہے، بہ ما تراوہس اسُن۔ میہ رۆٹ اسُن اندرے، سوچم میانہِ خاطرہ چھہ میونے مول بۆڈ۔ یوت تام میٲنس مالۍ سند ناو ہیێکھ، میہ نہ کانہہ اعتراض!!!

اکھ مصرعہ بوزو
طالب نہ کانہہ، جالب علم گۆو ضایع ونے کیا

شہناز رشید نس اکس غزل پیٹھ فیس بک گفتگو

(29-27اکتوبر 2013)

ghazla

نذیر آزاد: شہناز رشید چھہ سانہ زمانک نمائندہ شاعر۔ اوہند اسلوب چھہ بیون تہ سر تازہ تہ سیتی چھیس عروضس پیٹھ تہ سنۍ نظر۔میہ چھہ باسان زِ  یتھ غزلہِ منز ییتہ شہنازنہِ فکرِ ہنز ندرت ٹاکارہ چھیہ تتی چھہ سہ عروضی لحاظہ کیاہ تام نوو چیز ہیتھ آمت یہ نہ ونہِ میہ سمجھ یوان چھہ۔ میانہ حسابہ چھیہ یہ غزل بحر متقاربس منز۔ مطلعہس منز چھہ ” تہ” متحرک یس وزنس منز ” تی” یا ” تے” بنان چھہ ۔ یتھہ کنۍ  چھہ امیک وزن بنان فعولن ژورِ پھرِ۔( متقارب سالم)۔ مگر پریتھ شعرک گوڈنیک مصرعہ چھہ بنان فعولن فعولن فعولن فعل یۅس امچ محذوف صورت چھیہ۔ میون طالب علمانہ سوال چھہ یہ غزل چھا سالم کنہ محذوف ؟ یہ چھا رائج تہ جائز؟

منیب الرحمن: یتھے بہ کُنہِ جایہ عروض تہ املا لفظ وچھان چھس بہ چھس تھود گژھان وتھتھ۔ خبر یہ کیا بیمارۍ؟  گوڈنچ کتھ چھیہ یہ زِ یہ چھہ بہترین غزل۔ ینہ یہ  پہلو عروضی کتھن تل دبتھ گژھہِ۔ متحرک ردیف ورتاونہ کنۍ  چھہ فعولن سالم رکن فعول بنیوومت۔ شعرن ہندین گوڈنکین گوڈنکین مصرعن منز چھہ اکھ جاے ترٲوتھ (فعو) ورتاونہ آمت۔ میانہ خیالہ گژھہِ نہ یمن جاین سالم رکن تہِ ورتاونس کھوژن۔ وزنس پییہ نہ کانہہ فرق اگر فعول چہ جایہ فعو ییہ یا فعولن۔ اندس پیٹھ چلن تریشوے۔ کاشرس منز چھہ متحرک ردیف ورتاونہ سیتۍ  امکان ہران۔ میہ آو یہ غزل امہ رنگہ تہِ پسند۔

نذیر آزاد: گویا کہ کاشرس منزچھہِ یتھۍ  عروضی تجربہ کرنچ نہ صرف گنجائش بلکہ ضرورت؟

منیب الرحمن: دۅشوے۔ گنجایش تہِ تہ ضرورت تہِ۔

رفیق راز: لفظ ٲخرس پیٹھ امہ آیہ استعمال کرنس منز چھہِ واریا امکانات۔ونہِ لگہِ اتھ عام گژھنس وقت۔ شہناز صابنۍ  یہ غزل چھیہ ونہِ دویم کوشش۔ گوڈنچ ٲس شاید یہ: (ہتھیار وارہ وارہ چھہ تراواں بہار تہِ۔۔۔۔ہردک اثر قبول کراں گل عذار تہِ)۔۔۔(مشکیں خیال میانۍ چھِ چینکۍ غزال ھوۍ۔۔۔از میانہ ڈیڈہ تل چھہِ گدا گر عطار تہِ) ( نیب تہ فیس بک)

منیب الرحمن: راز صاب اتھ کتھہِ کڈۍ  تو گینۍ۔ کتھ چیزس لگہِ عام گژھنس وقت؟ توہۍ چھوا متحرک ردیفچ کتھ کران کِنہ کُنہِ مخصوص عروضی نکتچ؟

رفیق راز: منیب صاب یم الفاظ (تہ، بہ ژہ، سہ بیتر) چھہِ بنیادی طور دو حرفی (یعنی عروضہ حسابہ سبب) مگر اسۍ  چھک یم لفظ اک حرفی مانان۔ یمے لفظ دو حرفی ماننس لگہِ وقت۔کامل صا بس پتہ کٔر میہ تہِ یم لفظ دو حرفی مٲنتھ کوشش۔ وونۍ چھیہ شہناز صابن تہِ  قابل تعریف کوشش کرمژ۔بہ چھس مانان زِ یتین یم لفظ اکہ حرفی چھہِ استعمال گژھان تتین چھہ اسۍ  بنیادی طور اکہ حرفچ تخفیف کران یس عروضی حسابہ جائز تہِ چھہ، نتہ چھہ یمن لفظن منز دویم حرف ہائے مختفی۔میہ چھہ باسان وضاحت گیہ۔

بہ اوسس پراران زِ کانہہ ہییہ ھے اتھ عروضی سام۔ پریتھ شعرک گوڈنیک مصرع چھہ (فعولن فعولن فعولن فعل/فعول) تہ پریتھ شعرک دویم مصرع (فعولن فعولن فعولن فعولن) تہِ کیازِ (تہِ) چھہ دو حرفی میانہ حسابہ۔

شہناز رشید: شکریہ ، سیٹھاہ شکریہ تمہ آیہ کتھ کرنہ خاطرہ،یمہ آیہ میانۍ خواہش ٲس ۔ نذیر آزاد صاب عروضی معملاتن ہندِ حوالہ کتھ تلنہ باپتھ، تہ منیب صاب تہ راز صاب کتھ برونہہ پکناونہ باپتھ، نکتن واش کڈنہ تہ عروضی زاوۍ جارن تہ تجربن ووکھنے کرنہ خاطرہ توہہ ترشونی صاحبن ہند سۅ دلہ شکریہ ۔ یمن چیزن ہنز چھیہ  سخ ضرورت تہ یہ ضرورت ہیکہ صرف یہے نیب پیج پورہ کٔرتھ،،بلکہ یہ اکھ تحریک بنٲوتھ۔

نذیر آزاد: کامل صاب چھہ ” مس ملر ” (1955ع) مجموعس منز لیکھان ” یمہ نظمہ وننہ وزِ چھہ میہ شعوری طورمختلف صورژن تہ بحرن اندر تجربہ کرنس سيتۍ سيتۍ ۔۔۔۔۔۔” ۔ اتھ مجموعس منز چھیہ کامل صابنۍ  یژھ اکھ غزل تہ نظم شامل یتھ ٲخری حرف متحرک چھہ۔ غزلہ ہند مطلع چھہ ۔۔۔۔چھیہ نہ زندگی یمۍ  آسہِ کھیومت زخم کاری نہ/چھہ نہ زندگی واقف سہ دل یتھ بے قراری نہ۔۔۔ امہ باوجود چھس بہ یہ زانن یژھان زِ (1)ٲخری متجرک حرف مانوا اسۍ ژھوٹ آواز کِنہ زیٹھ ؟ (2) اکس شعرس منز ہیکہ وا اکھ مصرعہ سالم تہ بیاکھ محذوف بحرِ منز ونتھ ؟

رفیق راز: آزاد صاب میہ کو٘ر گۅڈے عرض زِ ( یہ، تہ، نہ، تہ، بہ) بیتر چھیہ زیچھہ آوازہ۔ یمن منز چھہ ہائے مختفی گپتھ۔ وونۍ گو٘و  ییلہ اسۍ  یم لفظ شعرس منز باگ چھہِ  استعمال کران تمہ ساعتہ چھہِ اسۍ  یہ ہائے مختفی دباوان یعنی اسۍ  چھہِ یمن لفظن تخفیف کران تہ اسہِ چھہ باسان زِ یم چھیہ ژھوچہ آوازہ۔ یہ تخفیف چھیہ غیر شعوری طور سپدان۔مانی تو یم چھہِ  اردو ( نہ، یہ) لفظن ھندۍ  پاٹھۍ  زیچھہ آوازہ تہِ تہ ژھوچہ آوازہ تہِ۔ عروضی لحاظہ ہیکن یم آوازہ منزس استعمال سپدنہ وزِ  ژھوچہ آوازہ بٔنتھ مگر ٲخرس پیٹھ استعمال سپدنہ وزِ  روزن یم زیچھہ آوازے تکیازِ  ٲخرس پیٹھ چھہ نہ تخفیف یوان کرنہ۔

مظفر عازم: رتن پورے بہتھ دوبۍ داتھرس پیٹھ
محی دینس کرو کتھ تارہ یکھنا
میہ پیو٘و  از یاد سہ اوسا اسہ غزل کِنہ وژن بوزناوان یمن یتھے کنہِ اندس پیٹھ متحرک حرف اوس آسان، دُحرفی اوس شاید پرنہ یوان ژہ بہ وغیرہ۔ میہ دو٘پ کٲنسہ پلوامہ کس ما آسہِ یاد۔

نذیر آزاد: راز صاب۔ میون موقف تہ چھہ یی زِ  ٲخرس پیٹھ آمژ متحرک آواز چھیہ سانہ آہنگہ مطابق زیٹھان تہ ٲخر چھہ ساکن گژھان۔ امہ لحاظہ چھہ نہ کامل صاب ،تہنز، شہناز صاب ( یژھہ کوششہ چھیہ بییہ تہِ کینژو دوستو کرِمژہ ) نین غزلن منز ٲخری حرف متحرک روزان۔میانہ خیالہ چھہ یہ فارسی/ اردوہکۍ پاٹھۍ سانہ زبانہِ ہندس مزاجس عین مطابق ۔ امہ منطقہ موجب چھہ شہناز صابن مطلع تہ باقی شعرن ہندۍ دویم مصرعہ سالم بحرِ منز۔ ییلہ زن یمن شعرن ہندين گوڈنکين مصرعن منز چھہ ٲ خری رکن ” فعو” یوسہ امچ محذوف صورت چھیہ۔ یہ صورت حال چھا روا؟

منیب الرحمن: یہ چھہ اکھ دلچسپ، تہ زیوٹھ بحث۔ عازم صاب چھہ صحیح فرماوان (عازم صابن کمینٹ یتھ کن یہ حوالہ چھہ، چھہ ڈلیٹ گومت۔ شاید تمو پانہ کورمت)۔ اندس پیٹھ متحرک لفظ چھہ لل دید، شیخ العالم تہ تمن پتہ تہ واریاہو شاعرو ورتوومت۔ مگر تم  ٲسۍ نہ فارسی عروض ورتاوان لہذا اوس نہ تمن کانہہ مسلہ، خاص کر واکھن منز۔ وژنن منز اگرچہ متحرک لفظ اندس پیٹھ ورتاونہ آمتۍ  چھہِ، اکثر جاین چھہِ لیہ ہندس زیچھرس سیتۍ  زیٹھراونہ آمتۍ ۔ "بہ” چھہ بنان "بو”۔ عربی عروضس منز چھہ متحرک لفظ ٲخرس پیٹھ ورتاونہ یوان تکیازِ تم چھہِ عروضس منز تنوعکۍ قایل۔ فارسی تہ اردوس منز چھہِ زیادہ سخت اصول۔ مثلا یہ زِ  اندس پیٹھ ییہ نہ متحرک لفظ (یتھ کن راز صابن پیٹھہ کنہِ اشارہ کو٘ر)۔ کینژھا چھہ امیک وجہ یمن زبانن ہندۍ لفظ۔ کاشرس منز چھہ ٲخرس پیٹھ متحرک لفظ ینک زیادہ امکان۔ اتھۍ  کن وچھتھ اوس کامل صابن یہ تجربہ کو٘رمت۔ راز صاب چھہِ ونان ز ِ”ٲخرس پیٹھ چھہ نہ تخفیف یوان کرنہ۔” یہ چھہ عروضی اصول یس کاشریو نہ بلکہ فارسی والیو بنوومت چھہ، عربی یس منز چھہ اتھۍ  عروضس منز ٲخرس پیٹھ تخفیف یوان کرنہ۔ کاشرۍ  لفظ "بہ” ، "تہ”، ژہ” چھہِ نہ زیچھہ آوازہ، املا ہس کُن مہ گژھو۔ حروف ملفوظی تہ مکتوبی بحث آسہِ توہہ یادے۔

فارسی تہ اردوس منز چھہ نہ "کہ” کاشرۍ  پاٹھۍ  "کِ” بولنہ یوان بلکہ "کے” یعنی تمن نش چھیہ یہ زیٹھ آواز، اسہِ نش نہ۔ اسہِ نش گیہ یہ ژھوٹ آواز۔

مظفر عازم: روایتک احترام کُرن چھہ پریتھ معزز شہری سند فرض۔ روایتس تلک پیٹھ کُرن چھہ پریتھ صاحب ایجاد سند فرض۔ پگاہ کیا چلہِ تہ کیا نہ، تہِ کُس آو وچھتھ ۔ چھِٹھ چھیہ لاگنۍ پننہ مزازہ۔
غزلہ ہن چھے نفیس، شوقہ سدرس چھہ وسن۔
اگر ریوایت نواز خوش کرنۍ  چھہِ، تیلہ گو٘و  گۅڈنیک مصرع "تہ” ورٲے لیکھن۔ تکیازِ وۅستو دو٘پ مطلع چھہ غزلہ کہ عروضک رۅخ مقرر کران۔ ﴿یہ تہ وۅستو زِ غزل ہیکہ مطلع ورٲے تہِ ٲستھ ۔﴾ شاعری تراو تہ، میہ چھہ نہ عام زندگی منز تہِ روسومن ہنز غلامی پسند، مگر کھیلس سیتۍ تہِ چھہ پکن، سوال چھہ صرف کمہِ وقتہ کیا چلہِ۔

نونک مسلہ: اقتباس نمبر 2

noon

 

نونک مسلہ کرن بہ ترین الگ قسمن منزتقسیم۔اکھ گوٚو سہ نون یس لفظہ کس ٲخرس پٮٹھ اکہِ زیٹھہ مصوتہ پتہ یوان چھہ۔ مثلا آسمان، موزون تہ زمین۔ یتھہ پاٹھۍ پتھ کن بیان سپد اتھ نونس متعلق اوس فارسی زبانۍ منز یہ اصول زِ نون چھہ نہ زیٹھہِ مصوتہ پتہ مجرا یوان۔ یہ اوس نون غنہ یعنی nasalization ۔جدید فارسی یس منز چھہ یہ نون اکہِ الگ مصمتہ کہ حیثیتہ شعرن منز پرنہ ، بولنہ یوان مگر ہیجلہِ کس زیچھرس چھیہ نہ کانہہ فرق پیوان۔پرانہِ اردو شاعری منز اوس زیادہ تر یۅہے اصول زِ نون چھہ نہ زیٹھہِ مصوتہ پتہ مجرا یوان اگرچہ کنہِ کنہِ اعلانیہ نون تہِ ورتاونہ چھہ آمت۔ البتہ جدید اردو شاعری منز ہریو اعلانیہ نونک ورتاو۔ کاشرِ شاعری منز چھہ زیٹھہِ مصوتہ پتہ نون دۅشونی صورتن منز میلان۔ پرانین شاعرن ہندس کلامس منز چھہ اکثر زیٹھم زیٹھہِ ہیجلیک ٲخری مصمتہ تقطیع منز پیوان۔ چاہے تم کاشرۍ نون آسن یا نیبرم یا بدل کانہہ آواز۔ رفیق راز چھہ ونان زِ نیبرمین لفظن منز ہیکون ٲخری نون مکتوبی غیر ملفوظی تہ مکتوبی ملفوظی اختیاری طور ورتٲوتھ، مگر کاشرین لفظن منز گژھہِ نہ یہ اختیار آسن۔ تمن منز گژھہِ یہ مکتوبی ملفوظی آسن۔رفیق رازن یہ اصرار چھہ دراصل کاشرین لفظن ہندس پھورس پیٹھ دٔرتھ۔مگر کاشرۍ شاعر خاص کر جدید دورکۍ شاعر چھہِ فارسی،اردو یہ [ ییتہ نس چھم نہ تران فکرِ میہ کیا اوس لیوکھمت۔ فایل ہیچم نہ کھولتھ] زِ اعلانیہ نون تہ نون غنہ سیتۍ چھہ نہ شعرس یا شعر چہ موسیقی کانہہ تلک پٮٹھ گژھان۔ لہذا اگرکاشرین لفظن ہندس سلسلس منز تہِ اختیار روزِ فرق پییہِ نہ کانہہ۔ یہ چھہ صحیح زِ اکس ہیجلس پیٹھ مشتمل یتھۍ لفظ مثلا زون، ہون چھہِ نہ نون غنہ ہس منز تبدیل گژھان۔یمن منز چھہ نہ کانہہ نون غنہ ورتاوان تہِ۔

دوٚیم گوٚو سہ نون یس لفظس منزس اکہِ ژھۅٹہِ مصوتہ پتہ یوان چھہ تہ یتھ پتہ کنہِ بیاکھ مصمتہ یوان چھہ۔ مثلا رنگ، منز،بند، بیترِ۔اردو تہ فارسی زبانۍ منز چھہ یتھین لفظن ہند نون تقطیع منز مجرا ننہِ یوان تہ یم لفظ چھہِ فاع کس وزنس پٮٹھ گنڈنہ یوان مگر کاشرس منز چھہِ یم لفظ فاع بجایہ فع وزنس پیٹھ گنڈنہ آمتۍ یمیک مطلب یہ چھہ زِ کاشرس منز چھہ یمن ہند نون مکتوبی غیر ملفوظی گنزرنہ یوان۔کاشرس منز کیازِ چھہ یہ امہ رنگہ گنڈنہ آمت؟ ظاہر چھہ تمیک وجہ چھہ سانہِ زبانۍ ہند صوتیات۔فارسی یس تہ خاص کر اردوس منز چھہ یتھین لفظن منز ٲخری مصمتس پٮٹھ نیم فتحہ تصور کرنہ یوان تاکہ یمن ہندس اندس پیٹھ یۅس مصمتن ہنز دُچ چھیہ سۅ ییہ پھٹراونہ۔ مثلا "رنگ” لفظ نمون۔ امہ چین آوازن ہنز تشکیل چھیہ یتھہ پاٹھۍ: (؍ر۔اَ۔ن۔گ؍)۔ مگر اردوس منز چھیہ امچ تشکیل یتھہ پاٹھۍ: (؍ر۔اَ۔ن؍ + ؍گ۔اَ) ۔ٲخری زبر چھیہ نہ پورہ زبر بلکہ سۅ یتھ نیم فتحہ ونان چھہِ۔صوتیاتی اصطلاحن منز ونو زِ ییلہِ اسۍ یمن لفظن ہندۍٲخری مصمتہ بولان چھہِ اسۍ چھہ ِٲسس منز نیبر نیروُن شہہ مکمل طور بند کران تہ رژھہِ کھنجہِ ٹھہرتھ شہک یہ گنڈ یلہ تراوان تہ امہ پتہ ینہ والہِ لفظہ کہ پھورہ خاطرہ تیاری کران۔ یژھن آوازن چھہِ stops ونان۔ اردو زبانۍ منز چھہِ یم مصمتہ بناونس اندر اتھ برعکس ٲسس منز ہوا مکمل طور بند کٔرتھ "یکدم” یلہ تراونہ یوان یمہِ کنۍ یمن پتہ کنہِ اکھ لۅکٹ مصوتہ بوزنس منز یوان چھہ یتھ نیم فتحہ وننہ آو۔ یژھن آوازن چھہِ plosives ونان۔ گویا یمن لفظن منز (مثلامنز، کنز، کۅنگ، زنڈ، رنگ) یوت نونک مکتوبی غیر ملفوظی تہ مکتوبی ملفوظی معاملہ چھہ تیوتے چھہ یمن پتہ کنہِ کہ مصمتی خوشک معاملہ یتھ منز نون اکھ حصہ چھہ۔اصل مسلہ چھہ زِ ٲخری مصمتہ چھا کاشرس منز متحرک بنان کنہ نہ۔ اردوس منز چھہ نہ یتھ کانہہ مسلہ تکیازِ تم چھیی یمن نیم فتحہ ہیتھ بولان یا تصور کران مگر اسۍ چھہِ نہ۔اسۍ چھہِ یمن لفظن ہندۍٲخری مصمتہ ادا کٔرتھ ٲسس تھکھ دوان۔ لہذایمن شعرن منز یمن لفظن ہندۍٲخری مصمتہ متحرک بناونہ آمتۍ چھہِ (تکیازِ فارسی تہ اردوس منز تہِ چھہِ) تمن شعرن منز چھہ یمن لفظن پیٹھ ضرورت یا معمول کھۅتہ زیادہ زور پیوان، تکیازِ یم چھہِ شعوری طور متحرک بناونہ آ متۍ، کینژھا فارسی ،اردو عروض کین اصولن ہنز پابندی کرنہ کس شوقس منز تہ کینژھا اردو شاعری ہنزِ مشقہِ ہندس نتیجس منز۔ اسۍ تلوکھ حکیم منظورنۍ زہ شعر یم رفیق راز ن نون اعلانیہ ورتاونچہ مثالہ رنگۍ دتۍ متۍ چھہِ۔ بییہ تلوکھ اسۍ شہناز رشیدنۍ تریہ شعر یم میہ پانہ ژارۍ متۍ چھہِ۔ یمو سیتۍ پکناوون اسۍ لفظن منزباگ کہ نونک بحث برونہہ۔حکیم منظور سند شعر:

کاش منظورن تہِ پوٚرمت آسہِ ہا لولک سبق
کاش وۅلرس منز زانہہ مہتاب وچھمت آسہِ ہن

امہِ شعرہ کس "منز” لفظس پٮٹھ چھہ ضرورت کھۅتہ زیادہ زور پیوان تکیازِ امہِ لفظک ٲخری مصمتہ چھہ متحرک بنٲوتھ زیٹھراونہ آمت۔دلچسپ نکتہ چھہ یہ زِ ییتہِ شاعرن لفظ "منز” نون مجرا نتھ فاع کس وزنس پیٹھ گوٚنڈمت چھہ، تتہِ چھس اتھ پتے ینہ وول لفظ "زانہہ” نوِ قاعدہ مطابق فاع کس وزنس پیٹھ گنڈن مشتھ گومت۔ "زانہہ” چھہ فع کس وزنس پیٹھ گنڈنہ آمت، حالانکہ دۅشونی منز چھہ منزس نون یوان تہ دۅشونی چھہ اندس پیٹھ مصمتی خوشہ۔یۅہے صورت حال چھہ شہناز رشید سندس بنمس شعرس منز :

کمن سا راوۍ متین ہند برونت چھکھ سپدان
یہ کہنزِ رایہ چھہِ تارکھ وسان آبس منز

اتھ شعرس منز تہِ چھہ شاعرن نون مجرانتھ "ہند” لفظ فاع کس وزنس پٮٹھ گوٚنڈمت یمہِ سیتۍلفظس معمول کھۅتہ زیادہ زیچھر لوٚگمت چھہ ، مگر اتھ پتے ینہ والہِ "برونت” لفظک نون چھس امہِ قاعدہ مطابق ورتاون
مشتھ گوٚمت۔اتھ منز تہِ چھہ منزس نون یوان۔ اتھ لفظس منز چھہ نون مکتوبی غیر ملفوظی بنیومت۔ امی شعرہ کس دوٚیمس مصرعس منز چھہ بییہ "کہنزِ” لفظک نون اعلانیہ گنڈن مشتھ گوٚمت، حالانکہ اتھ لفظس منز تہِ چھہ نون منزس واقع۔ یہ کتھ چھیہ ثیقہ زِ حکیم منظورن چھہ "منز” لفظس تہ شہناز رشیدن "ہند” لفظس منزنون شعوری طور اعلانیہ ورتوومت۔ مگر باقی لفظن یعنی "زانہہ”،”برونت” تہ "کہنزِ” کن چھکھ نہ ظن رودمت۔نتہ چھیہ یہ حقیقت زِ یمن شاعرن چھیہ یمن لفظن منزنونہ رنگۍ فرق باسان یمیک بحث برونہہ کن ییہِ۔وچھوکھ شہناز رشیدنۍ بییہ زہ شعر:

پتھ پھیرہن چھیہ لار، پکن برونہہ تہ زیٹھ کھے
یتھ کریہنہِ رٲژ "منز "کرن کیا سفید گرۍ
شر بہ اوسس تہ اچھو "منزہ” نیکھ میانۍ کل ارزتھ
وۅنۍ گمتۍ سخ چھہِ پشیمان دپاں مۅختہ دنم ہیتھ

یمن دۅن شعرن منز چھہِ خط کشیدہ لفظ’’ منز‘‘ تہ ’’منزہ‘‘ دۅشوے فاع کس وزنس پٮٹھ گنڈنہ آمتۍ۔ ییلہ یم شعر اسۍ پران چھہِ اسۍ چھہِ نہ یمن لفظن منز کانہہ فرق کٔرتھ ہیکان۔وجہ یہ زِ اسۍ چھہِ نہ یم لفظ عام بول چالس منز متحرک بناونکۍ عادی۔ چونکہ اسہِ چھہِ زبانۍ منز یمن لفظن ہندۍمتحرک تہ غیرمتحرک جوڑ موجود لہذا چھہِ نہ اسۍ امہِ مۅکھہ تہِ منز، رنگ، کنز، کۅنگ، بیترِ لفظن منز اردوکۍ پاٹھۍٲخرس پیٹھ نیم فتحہ پھورراوان کران۔لفظن پتہ کنہِ نیم فتحہ نہ لگاونچ نہج چھیہ کاشرس منز ییژہمہ گیر زِ اسۍ چھہِ اندہ متحرک لفظن (مثلا منزہ، رنگہ، کنزہ، کۅنگہ، بیترِ) ہندۍٲخری مصوتہ تہِ اکثر حذف کران تہ یم لفظ اندہ غیر متحرک بناوان۔ اتھ نہجہ متعلق چھہ یتھ کتابہِ منز بییس جایہ بحث کرنہ آمت۔ اتھ برعکس چھہ امۍ سے شاعر سندس بییس شعرس منز (یس رفیق رازن اعلانیہ نون چہ مثالہ پاٹھۍ دیتمت چھہ)یہ مسلہ یتھہ پاٹھۍ حل گژھان زِ مصمتی خوشہ کہ ٲخری مصمتہ (گ) پتہ چھہ مصوتہ (اِ) یوان یتھ سیتۍ یہ رٔلتھ مصمتی خوشہ پھٹراوان چھہ، تہ (ن) تہ (گ) چھہِ الگ الگ پرنہ یوان۔ اگر اتھ لفظس پیٹھ تاکید تراونہ ییہِ (معنوی طورما روزِ سہ مناسب) تیلہِ چھہ (گ) مصمتہ مشدد بناون پیوان۔

ہے گلو! شوٚنگتھ مہ روزو اوس کس تامتھ ونان
تمۍ چھہ ممکن واو ما بیتاب وچھمت آسہِ ہن

اسہِ چھہِ زبانۍ منز یمو منزہ کینژن لفظن (منز، کنز، کۅنگ، زنڈ، رنگ) ہندۍ جوڑ تہِ موجود یمن منز پتم مصمتہ متحرک چھہِ۔ مثلا منزہ، کنزہ ،کۅنگہ، زنڈہ، رنگہ۔ نیتوکھ شہناز رشید سندۍ یم تریہ شعر
؂
پتھ پھیرہن چھیہ لار، پکن برونہہ تہ زیٹھ کھے
یتھ کریہنہِ رٲژ "منز "کرن کیا سفید گرۍ
شر بہ اوسس تہ اچھو "منزہ” نیکھ میانۍ کل ارزتھ
وۅنۍ گمتۍ سخ چھہِ پشیمان دپاں مۅختہ دنم ہیتھ
کمن سا راوۍ متین ہند برونت چھکھ سپدان
یہ کہنزِ رایہ چھہِ تارکھ وسان آبس منز

شہناز سندس ترییمس شعرس منز چھہ لفظ "ہند”(دال متحرک بنٲوتھ) زیٹھراونہ آمت یمہِ کنۍ اتھ پیٹھ ضرورت کھۅتہ رژھ کھنڈ زیادہ زور پیوان چھہ۔ یی چھہ تسندس گۅڈنکس شعرس منز تہِ "منز” لفظس گژھان۔ یتہِ فارسی والیو پننہِ خاطرہ واریاہ اصول بناوۍ، کینہہ تھٲوکھ اختیاری (پتھ کن کوٚر میہ تمن ہند بیان) ، تتہِ ہیکوکھ اسۍ کاشرِ کہ خاطرہ تہِ الگ اصول بنٲوتھ۔ اسہِ چھہِ نہ تہندۍ اصول پالنۍ ضروری۔ تہِ کرنہ سیتۍ چھہِ نہ اسۍ عروضہ نیبر نیران۔ یمن چیزن ہنز چھیہ اتھ عروضس منز گنجایش موجود۔ یمن لفظن ہندس سلسلس منز چھہ سون اصول یہ زِ یمن منز چھہ نون مکتوبی غیر ملفوظی۔ کینژن جاین اگر ہیتی یا معنوی مجبوری آسہِ تہ تتھ مدنظر اگر یہ نون ملفوظی ورتاونہ ییہ سۅ چھیہ وکھرہ کتھ۔مگر عام اصول گژھہِ سانہ زبانۍ ہندِ صوتی مزازہ مطابق آسن۔چونکہ یمن لفظن منز چھہِ نہ اسۍ نیم فتحہ ورتٲوتھ مصمتی خوشہ پھٹراوان، لہذاچھہ نونے ختم گژھان۔ وتھ چھیہ یہ نیران زِ نون ترٲوتھ چھہ نونہ برونہم مصوتہ کھٍنکھراونہ nasalize یوان۔ یہ کرنہ سیتۍ چھہ نون نصف حالتس منز لفظس منز موجود روزان۔امہِ قسمہ کین نونن منز چھہِ تم لفظ تہِ یوان یم اکہِ بجایہ دۅن ہیجلین پیٹھ مشتمل چھہِ۔ مثلا اندر، گندر، بیترِ۔ یمن لفظن منز چھہِ نہ مصمتہ اکھ اکس پتہ اکۍ سے ہیجلس منز یوان بلکہ چھہِ یم اکہِ ہیجلہِ کس اندس تہ بییہِ ہیجلہِ کس گۅڈس منز یوان۔ یمن ہند ژھین چھہ نہ سہ مسلہ پیش کران یس اکۍ سے ہیجلس منز ینہ والۍ مصمتہ کران چھہ۔ مگر کاشرس منز چھیہ یہ عام نہج زِ نون پتہ اگر کانہہ دندۍ مصمتہ dental consonant یوان آسہِ ، سہ نون چھہ پیوان تہ تمہِ بدلہ چھہ تمہِ برونہہ ینہ وول مصوتہ نون غنہnasalize بنان۔وجہ یہ زِ نون تہِ چھہ دندۍ مصمتہ ۔ زہ دندۍ مصمتہ اکھ اکس پتہ ینہ سیتۍ چھہ اکہِ کہ راونک امکان ہران۔ لہذا گژھن یم لفظ (مفا) کس وزنس پٮٹھ تہِ موزون۔ یعنی یہند نون تہِ ییہِ کاشرس منز مکتوبی غیر ملفوظی گنزراونہ۔ ضمنا چھہ عرض زِ یتھۍ ہوۍ لفظ اگر شعرن منز تھکہ جاین (caesura)پٮٹھ متحرک ورتاونہ ین، تمن جاین گژھہِ نہ یمن ہند صوتی عادتس خلاف معمول آسنک احساس۔

نونک مسلہ: اقتباس

Salt spilled from shaker

نونس پیٹھ میانہ مضمونہ منزہ اکھ اقتباس:

نونس متعلق یم تہِ لفظ مختلف بحثن منزمثالن ہندۍ پاٹھۍ پیش کرنہ یوان چھہِ، حقیقت چھٮہ یہ زِ کانسہِ چھہ نہ تمن لفظن ہندس اصل مسلس کن ظن گوٚمت۔ حقیقت چھیہ یہ زِ یمن لفظن ہند تعلق چھہ سیدِ سیوٚد کاشرِ زبانۍ ہندس صوتی مزازس سیتۍ۔ اگر یمن لفظن ہندس معاملس منز کاشریو شاعرو غیرشعوری طورکانہہ اجتماعی فیصلہ نمت چھہ، تتھ پتہ کنہِ چھہ سانہِ زبانۍ ہند مزازہ اوسمت۔ رفیق راز چھہ ونان زِ "یہ چھٮہ نہ عروض نش بٮہ خبری ہنز مثال بلکہ عروضس سیتۍ سہل انگاری ورتاونچ مثال "۔ (انہار 2005، ص ۱۱۱) امہ بیانہ تلہ چھہ ظاہر زِ یمن لفظن متعلق یم فیصلہ ننہ آمتۍ چھہِ تم چھہِ نہ لاعلمی ہند نتیجہ بلکہ "سہل انگاری” یتھ بہ بہتر پاٹھۍ کاشرِ زبانۍ ہندِ مزازچ مجبوری ناو دمہ۔ سوال چھہ نہ قابلیتک زِ اسہِ تگیا یا نہ تگیا فارسی ؍اردو عروضس منز یمن لفظن ہندس معاملس منز کھرہ کرنہ آمت اصول پننٮن شعرن منز مہارت سان ورتاون بلکہ یہ زِ یہ اصول چھا سانہِ زبانۍ ہندس صوتی عادتس ستیۍ واٹھ کھٮوان ؟یہ چھہ نہ عروضی چابکدستی ہند معاملہ بلکہ پننہِ زبانۍ ہنزِ صوتی آسایشہِ ہند معاملہ۔

رفیق رازنۍ گۅڈنکۍ زہ نکتہ چھہِ یتھ کتھہِ کن اشارہ کران زِ عروض چہ تقطیع منز چھہِ ملفوظی اچھر شامل گژھان، مکتوبی نہ۔ یہ ملفوظی مکتوبی بحث آو عربی عروضس منز تشدید تہ زیٹھٮن مصوتن ہندس سلسلس منز بارسس، مگر امہِ بحثچ اہمیت ہرییہ ییلہ عروض باقی زبانن تام ووت یمن ہند ہیجلۍساخت عربی نش مختلف اوس۔ لہذا اوس سوال زِ کم اچھر نموکھ تقطیع منز مجرا تہ کم نموکھ نہ۔ اصول اوس بنتھے۔ اچھرن کن مہ گژھو۔ آوازن کن گژھو۔ اگر آواز اچھرہ وراے لفظس منز موجود چھٮہ، سۅ ییہ شامل کرنہ تہ اگر اچھرٲستھ تہِ آواز آسہِ نہ ، سہ اچھر ییہ نہ شامل کرنہ۔ یہ اصول چھہ آسان مگر کینژن اچھرن متعلق یہ فیصلہ کرن چھہ مشکل زِ تم چھا مکتوبی غیر ملفوظی کنہ مکتوبی ملفوظی، تکیازِ تمن آوازن متعلق چھہ اختلاف راے۔ یمن منز ہیکون اسۍ نونک معاملہ تہِ تھٲوتھ۔ یہ ملفوظی غیر مکتوبی تہ مکتوبی غیر ملفوظی معاملہ چھہ یتھ کتھہِ کن اشارہ زِ عروضس منز چھہِ نہ اچھر جسمانی طور اہم بلکہ چھہ یہند مجرد تصوری وجود اہم۔ تقطیع چھٮہ امی تصوری اچھرہ مطابق سپدان، زبانۍ ہندِاملا مطابق نہ۔ لہذا ہٮکو نہ اسۍمکتوبی غیر ملفوظی تہ ملفوظی غیر مکتوبی تجزیہ وراے کنہِ شعرچ تقطیع کرتھ۔کینہہ اچھر چھہِ تراونہ یوان تہ کینہہ چھہ تصور کرنہ یوان۔ ییتہِ نس روزِ نہ یہ دلچسپی نٮبر اگر اسۍ عربی تہ فارسی یس منز یمن ہند مختصر جایزہ ہٮمو۔ عربی زبانۍ منزاوس نہ اچھرن ہنزِ امہِ کمی بیشی ہند زیوٹھ فہرست مگر فارسی یس منز گوٚو اتھ ہرٮر۔

عربی یس منز چھہِ تقطیع منز بنم اچھر تصور کرنہ یوان یعنی ملفوظی غیر مکتوبی ماننہ یوان:
(1)تنوین؛(2) تشدید؛(3) اللہ، ھذی، ذالک ہوٮن لفظن منزالف؛ (4)مصرعہ کس ٲخرس پٮٹھ ژھوٚٹ مصوتہ۔
یمو علاوہ چھہ عربی زبانۍ منز ھمزہ الوصل تراونہ یوان (یعنی مکتوبی غیر ملفوظی ماننہ یوان)۔

فارسی زبانۍ منز ہریوو یہ فہرست سٮٹھا۔ مثلا بنم اچھر آیہ مکتوبی غیر ملفوظی قرار دنہ:
(1) (خ) پتہ ینہ وول ژھوٚپ واو(و)؛
(2)زیٹھہِ مصوتہ پتہ نون (ن) یعنی نون غنہ؛
(3)یکوٹہ ینہ والٮن ساکن اچھرن منز ترییم اچھر یعنی نیست (ن ی س ت )لفظک (ت) ۔
یمو علاوہ آیہ بنم اچھر اختیاری طور مکتوبی غیر ملفوظی قرار دنہ:
(4)خاص کرعربی لفظن منز تشدید (یتھ تم تخفیف ونان چھہِ۔ مثلا نیّت ، دُرّ، کفّ بیترِ لفظن منز تشدیداختیاری طور ختم کرنۍ۔)؛
(5) ہاے مخفی مثلا کہ، نامہ لفظن ہندٲخری (ہ)؛
(6) لفظک ٲخری واو (و) اگر امہِ نش مراد مصوتہ آسہِ۔ مثلا دو، تو، بیترِ ۔
بنم اچھر آیہ اختیاری طور ملفوظی غیر مکتوبی قرار دنہ:
(1) کینژن لفظن منز آیہ اختیاری طور تشدید تصور کرنہ۔ مثلا شکر بنیوو شکّر، امید بنیوو امّید؛
(2) اضافت آیہ اختیاری طور مشدد کرنہ۔ مثلا رنگِ گل آو (رنگے گل) تہِ گنڈنہ؛
(3) بہ ، نہ بیترِ آیہ (بی) تہ (نا) تہِ گنڈنہ۔
یمو علاوہ آے کینہہ متحرک اچھراختیاری طور ساکن تہِ بناونہ۔
مثلاگفتمش(گف۔ت۔مش) آو گفتمش (گف۔تمش) میم ساکن بنٲوتھ تہِ، بگذرد (ب۔گ۔ز۔رد) آو بگذرد (بگ۔ ز۔ رد) گاف ساکن بنٲوتھ تہِ ، تہ عربی لفظ برکت (ب۔ر۔کت) آو برکت (بر۔کت) رے ساکن بنٲوتھ تہِ گنڈنہ۔
یتھے پاٹھۍ آیہ ساکن اچھر اختیاری طورمتحرک بناونہ۔
(1)مثلا( عشق و حسن) آو (عشقو حسن) قاف متحرک بنٲوتھ تہِ ،(2) نصر تہ رقم ہوۍ لفظ آیہ (فع۔ل) علاوہ (ف۔عو) صۅاد تہ قاف متحرک بنٲوتھ تہِ گنڈنہ۔

امہ فہرست تلہ ہیکہِ کانہہ تہِ اندازہ کٔرتھ زِ فارسی یس منز کٲژا تبدیلیہ تہ اختیارات آیہ پیدہ کرنہ تاکہ شعرن ہیکہِ صحیح تقطیع گژھتھ۔ اردو والٮو کرِ نہ زیادہ تبدیلییہ تکیازِ فارسی والٮو یم تبدیلیہ کرِ مژہ آسہ تم آیہ تمن بکار۔ امہِ علاوہ رودۍ تم فارسی عروضس زیادہ تراچھ ؤٹتھ تقلید کران۔ اردوس چھہِ اسۍ ساری واقف، لہذا یمو اسۍ سیوٚدے کاشرس کن واپس۔

کلاسیکل عربی زبانۍ منزٲسۍ نہ ہیجلہِ کس شروعس تہ ٲخرس پٮٹھ(ٲخرس پٮٹھ خال خال) مصمتن ہندۍ خوشہ cluster مگر کینژن زبانن منز مثلا فارسی یس منزٲسۍواریاہن لفظن اندرٲخرس پٮٹھ مصمتی خوشہ یوان۔ فیصلہ سپد یہ زِ دوٚیمس مصمتس پٮٹھ گژھہِ نیم فتحہ تصور کرنہ ین تاکہ مصمتہ گژھہِ تقطیع منز شامل۔ یمن لفظن ہندۍ دۅشوےٲخری مصمتہ ٲسۍ ساکن۔ عربی عروض مطابق ہٮکن نہ زہ ساکن حرف اکۍ سے جایہ جمع گژھتھ، لہذا آوٲخری مصمتہ متحرک بناونہ، محسوس یا تصور کرنہ۔اگر امہِ ٲخری مصمتہ پتہ مصوتہ یوان آسہِ یہ چھہ پانے متحرک بنان تہ اگر مصمتہ یوان آسہِ،یا مصرعس منز تھکھ cesura لگان آسہِ، یہ چھہ متحرک تصور کرنہ یوان ۔ کاشرس منز چھہِ لفظہ کس آغازس منزتہِ مصمتی خوشہ تہ امہِ خوشک گۅڈنیک مصمتہ چھہ عربی عروضی اصطلاحن منز ساکن اچھر۔ عربی زبانۍ تہ عروضس منز چھہ نہ لفظہ کس آغازس منز ساکن اچھر ینک کانہہ سوالے۔ تتہِ لگاوہن اتھ ہمزہ الوصل بتھہِ تہ خوشہ کرہن دۅن حصن منز تقسیم۔ مگر اسۍ ہٮکو نہ تہِ کٔرتھ، لہذا بنوو اسہِ غیرشعوری طور یہ اصول زِ دویو منزہ ییہ اکوے مصمتہ تقطیع اندر۔ یعنی یمو منزہ بنیوو دوٚیم اچھر مکتوبی غیر ملفوظی، حالانکہ صوتیات چہ وچھن ترایہ کنۍ چھہِ یم دۅشوے مکتوبی ملفوظی۔” کرٮکھ” لفظس منز چھٮہ گۅڈنکس ہیجلس منز وارہ کارہ (ک) تہ (ر) دۅشونی مصمتن ہنزہ آوازہ موجود۔یتھے پاٹھۍ” رنگ” لفظک نون تہِ آو مکتوبی غیر ملفوظی اچھر بناونہ، حالانکہ آواز چھٮہ اکس یا بییس حالتس منز موجود۔

وزنن ہنز پارۍ زان (6): پیچیدہ ماترا وزن

شت

پیچیدہ ماترا وزن ورتاون واجنٮن زبانن منز چھہِ سنسکرت، یونانۍ، لاطینی تہ کلاسیکل عربی شامل۔ کلاسیکل عربی یک عروض ووت اسہِ تام گوڈہ فارسی تہ پتہ ارود کنۍ۔ سانۍ شاعر یمن منز محمود گامی سندِ پیٹھہ مہجورس تام ساری شاعر شامل چھہِ، ہیکۍ تہ کلاسیکل عربی عروضکۍ تم وزن بہتر پاٹھۍ ورتٲوتھ یم پیچیدہ ماتراہن پیٹھ مبنی چھہِ، کینژھا زبانۍ ہندِ مزازہ کنۍ تہ کینژھا ہیجلۍ عروض ورتاونہ کہ عادتہ کنۍ۔ مگر عربی فارسی عروضکۍ تم وزن، یم بنیادی طور ہیجلۍ وزن چھہِ، ورتاونس منز آیہ نہ یمن کانہہ مشکل پیش۔ مہجورنہِ پتہ کیو جدید شاعرو ورتاوۍ پیچیدہ ماترا وزن اکتسابی طور نسبتا کامیابی سان۔

کلاسیکل عربی عروضکۍ وزن چھہِ پیچیدہ ماترا وزن، امہِ کنۍ تکیازِ یمن منز چھیہ ماترا گنتی علاوہ، پدین اندر ماتراہن ہنز ترتیب تہ ترکیب تہِ آہنگ خاطرہ اہم۔ گوٚو یمن وزنن منز چھہ آہنگک دوٚگن معیار ورتاونہ یوان۔مثلا کلاسیکل عربی عروضس منز چھہ اکھ شراہ ماترا وزن یس یتھہ پاٹھۍ چھہ:

22121 22121 = 16 ماترا

یمہِ ترتیبہ یم ماترا اتھ وزنس منز یوان چھہِ، تمہ منزہ چھیہ یہنزاکھ خاص دہراونہ ینہ واجینۍ تنظیم ننۍ نیران۔ یوٚت تام نہ ماتراہن، یا ہیجلین یا تاکیدن ہنز اکھ خاص ترتیب قایم گژھہِ تہ سۅ وزنس منز دہراونہ یی، توٚت تام چھہ نہ پدین ہند کانہہ جواز۔ اسہِ وچھ پتمین صفحن پیٹھ اردو پریژھہِ تہ لل واکھس تہ رفیق رازنس کلامس منز چھیہ نہ ماتراہن ہنز کانہہ مخصوص ترتیب قایم گژھان تکیازِ پریتھ مصرعس منز چھیہ ماتراہن الگ ترتیب، لہذا چھہ نہ تمن منز پدین ہند کانہہ جواز۔ تمن منز چھہ ماتراہن ہند کل تعداد سادہ آہنگ پیدہ کران۔ مگر پیٹھمس کلاسیکل عربی وزنس منز گژھن تعدادہ کنۍ16 ماترا آسنہ علاوہ تم ماترا پیٹھمہِ مخصوص ترتیبہ منز واقع سپدنۍ۔  یم ماترا ہیکن دۅن دہراونہ ینہ والین پدین منز تقسیم سپدتھ: 22121   /22121 یم پدۍ چھہِ عروضس منز مفاعلاتن مفاعلاتن کیو ارکانو (افاعیل) سیتۍ ظاہر کرنہ یوان۔

مفاعلاتن پدکۍ ماترا ہیکوکھ اسۍ ِ یتھہ پاٹھۍ سمجتھ۔ یہ ٹیبل گوو غلط فارمیٹ۔ پٔرو کھوورِ پیٹھہ دچھُن کن۔

کل ماترا تن علا مفا
پٍنژم ہیجل ژورمٚ ہیجل تریم ہیجل دوٚیم ہیجل گۅڈنیک ہیجل
ن زبر ت لا ل زیر ع آ ف زبر م
8 1 1 x 2 x 1 x 2 x 1 x
نوٹ: یہ کتھ آیہ گۅڑے وننہ زِ ہیجلیک گۅڈنیک (یا گۅڈنکۍ) مصمتہ چھہ نہ ماترا گنزرنہ یوان۔

یتھ عربی بحرس منز یہ پوٚد ورتاونہ یوان چھہ تتھ چھہِ بحر جمیل ونان۔ یہ چھہ نہ کاشرس منز زیادہ ورتاونہ آمت، حالانکہ کاشرس آہنگس چھہ سیٹھا براہ۔ اگر ورتاونہ تہِ آمت چھہ تہ ژۅن پدین ہنزِ شکلہِ منز۔ عبدالاحد آزادن چھہ یہ پوٚد خاص کر تمن نظمن منز ورتوومت یمن منز شکوہ تہ گراوہ چھیہ ۔ پیٹھمس مخصوص وزنس پیٹھ (جمیل مربع سالم) چھن اکھ بٲتھ "نغمہ بیداری” ناوہ لیوٚکھمت یمکۍ کینہہ بند یم چھہِ:

حقیقتک رنگ دواں حبابس

مشک ملاں کاغذی گلابس

کران بدنام انقلابس

ہیواں تھوُن پردہ آفتابس

یہ دلبری چھا ستمگری چھا

یہ رہزنی چھا یہ رہبری چھا

چھہ سور ملۍ ملۍ چھوان نورس

فریب غیبک دواں حضورس

خودی وناں نخوتس غرورس

تھیکان فرعون کوہ طورس

یہ دلبری چھا ستمگری چھا

یہ رہزنی چھا یہ رہبری چھا

اسۍ کرو گۅڈنکہ بندچ تقطیع یتھہ پاٹھۍ۔ یہ ٹیبل گوو غلط فارمیٹ۔ پٔرو کھوورِ پیٹھہ دچھُن کن۔:

کل ماترا حبابس دواں رنگ حقیقتک لفظ
16 221 21 2 2121 ماترا
گلابس کاغذی ملاں مشک لفظ
16 221 212 21 21 ماترا
انقلابس بدنام کران لفظ
16 2212 122 121 ماترا
آفتابس پردہ تھوُن ہٮواں لفظ
16 2212 12 21 21 ماترا
ستمگری چھا دلبری یہ لفظ
16 2121 2 212 1 ماترا
چھا رہبری یہ چھا رہزنی یہ لفظ
16 2 212 1 2 212 1 ماترا

(1)یمہ تقطیع منزہ چھہ یہ ظاہر زِ فارسی عربی چھہ آہنگک دوٚگن معیار ورتاوان: ماترا تہ تمن ہنز پدۍ بندی۔

(2) کاشرس منز چھہ نہ عام طور رنگ یا یتھے پاٹھۍ منز، بند، اند بیترِ لفظن ہند /ن/ مصمتہ گنزرنہ یوان، بلکہ چھہ یہ مصوتہ چہ کھونکھنیارچ نشانی ماننہ یوان۔ لہذا چھہ نہ یہ اکثر ماترا گنزراونہ یوان۔ (3) دوان، ملان، کران، ہیوان، بیترِ لفظن ہند پتم نون چھہ اختیاری طور یا مصمتہ گنزرنہ یوان (اعلانیہ نون) یا صرف مصوتک کھونکھنیار، یتھ نون غنہ ونان چھہِ۔

محمود گامی سندِ پیٹھہ مہجورس تام چھہِ تمام شاعرن تم وزن پھٹان یمن منز زہ لۅکچہ ماترا اکس خاص جایہ پوٚتس پتھ یوان چھیہ۔ ماتراہن ہنز یہ مخصوص ترتیب چھیہ نہ کاشرس مزازس (لیہ) سیتۍ واٹھ کھیوان۔ یہ ٲس سۅ بصیرت یمیک اظہار امین کاملن مختلف جاین کوٚرمت چھہ، خاص کر "شعرن منز وزنہ پھیرہ” مضمونس منز۔ مثالہ پاٹھۍ نمون یہ وزن: مفعول مفاعیل مفاعیل مفاعیل فعولن۔ امیک ماترا تعداد تہ تمن ہنز ترتیب چھیہ یہ۔ یہ ٹیبل گوو غلط فارمیٹ۔ پٔرو کھوورِ پیٹھہ دچھُن کن۔:

لن فعو عیلُ مفا عیلُ مفا لُ مفعو
2 21 12 21 12 21 1 22
221 1221 1221 122
پدین الگ، یمن ماتراہن ہند چھہ یہ نمونہ بنان:
22 11 22 11 22 11 22

اتھ وزنس منز چھہِ زہ ماترا، زہ ماترا پتہ اکھ ماترا، اکھ ماترا یوان۔ ییتہِ نس ییتہِ نس اکھ ماترا اکھ ماترا پوٚتس پتھ یوان چھیہ، تتہِ نس چھہ اکثر سانین شاعرن وزن پھٹان۔ تتہِ نس چھہ اکثر اکھ ماترا اکھ ماترا بجایہ زہ ماترا اکھ ماترا گژھان۔ یہ چھہ نہ صرف اکس شاعرس گوٚمت بلکہ محمود گامی سندِ پیٹھہ مہجورس تام تہ تس یور کن تہِ چھہ اکثر شاعرن ہند یۅہے حال یم نہ یہ وزن اکتسابی طورشعوری کوششہِ ورتاوان چھہِ۔ یہ زہ ماترا پتہ اکھ ماترا اکھ ماترا لے چھیہ نہ کاشرین شاعرن کاپہِ یوان۔ مگر ییلہ اسۍ یم شعر عروضی گز گتی لاگنہ ورٲے پران چھہِ، اسہِ کیازِ چھہِ نہ یم بیہ آہنگ باسان؟ تمیک وجہ چھہ زِ یوٚدوے یم پیچیدہ ماترا وزنہ حسابہ پھٹان چھہِ یعنی یہندس کل ماترا تعدادس ہریر یا چھۅنیر گژھان چھہ تہ یہنز ماترا ترتیب درہم برہم گژھان چھیہ، یم چھہِ کاشرِ ہیجلۍ عروضہ مطابق برابر یوان۔ چونکہ سانۍ زبان چھیہ بنیادی طور ہیجلیو سیتۍ (ماترا سیتۍ نہ) وقفہ مینان، لہذا چھیہ نہ آہنگس سانہِ خاطرہ کانہہ فرق پیوان۔ وچھو رسول میرنہِ اکہ غزلکۍ ماترا تہ ہیجلۍ اکس اکھ مقابلہ۔

 

رسول میر نہ غزلچ ماترا تہ ہیجلۍ تقطیع کل ماترا
مصرعہ متہِ روز دما روزہ دریم چانہ لولرے
ماترا تعداد 2 12 21 12 21 12 212 22
ہیجلۍ تعداد 1 2 3     4 5     6 7       8 9       10 11 12 12
مصرعہ شرۅنہ دار سۅنہ سنزہ بنگرِ گریم چانہ لولرے
ماترا تعداد 2 12 2 12 12 21 12 212 25
ہیجلۍ تعداد 1 2 3 4 5   6 7   8 9   10 11 12 12
مصرعہ لب تشنہ چھس در باغ بہت سرو روانو
ماترا تعداد 2 12 2 2 12 21 12 221 23
ہیجلۍ تعداد 1 2 3 4 5 6     7 8       9 11 12 12
مصرعہ بو حال ونے بوز کنے یارہ مسا روش
ماترا تعداد 2 12 21 12 21 12 21 12 23
ہیجلۍ تعداد 1 2 3 4 5 6   7 8     9 10     11 12 12
مصرعہ میہ جویہ اشکنہِ آبہ بریم چانہ لولرے
ماترا تعداد 2 12 112 12 21 12 212 25
ہیجلۍ تعداد 1 2 3   4 5 6     7 8     9 10     11 12 12
مصرعہ میہ اچھہ پوشن مالہ کریم چانہ لولرے
ماترا تعداد 2 11 22 12 21 12 212 22
ہیجلۍ تعداد 1 2 3       4 5 6       7 8     9 10   11 12 12
مصرعہ تیتھ سوز عشقن باد صبا بوز رسولس
ماترا تعداد 2 12 22 12 21 12 221 23
ہیجلۍ تعداد 1 2 3   4 5 6 7     8 9 10   11     12 12
مصرعہ یتھ مشک روزیم گل میہ ہریم چانہ لولرے
ماترا تعداد 2 12 22 2 1 21 12 212 23
ہیجلۍ تعداد 1 2 3   4 5 6 7     8 9 11   12 12

امہِ وزنہ علاوہ بییہ زہ فارسی وزن یم اکثر کاشرین شاعرن پھٹان چھہِ، چھہِ یم:

مفتعلن       مفاعلن     مفتعلن      مفاعلن

2112           2121           2112          2121

فاعلاتن       فعلاتن         فعلاتن         فعلن

2212          2211           2211           211

یمن وزنن منز تہِ چھہ اکھ ماترا اکھ ماترا اکھ اکس پتہ یوان یس کاشرِ لیہ سیتۍ مطابقت چھہ نہ تھاوان۔ ظاہر چھہ پیچیدہ ماترا وزن چھہ نہ تتھہ پاٹھۍ لچکدار یتھہ پاٹھۍ ہیجلۍ وزن چھہ خاص کر کاشرِ کہ خاطرہ۔ یمن پیچیدہ ماترا وزنن منز گژھہِ برابر ماترا تعداد آسُن۔ ماتراہن ہند ہریر یا چھۅنیر چھہ یمن ہند وزن ڈالان تہ یمن ہنز مخصوص ماترا ترتیب تہِ درہم برہم کران۔ یمن ہنز ماترا ترتیب تہِ گژھہِ کُنی آسنۍ۔ ہیجلۍ وزن چھہِ امہِ رنگہ لچکدار۔ کاشرس چھہ ہیجلۍ وزن اس لئے براہ آمت تکیازِ کاشرِ زبانۍ منز یۅس لچک تمن ہیجلین منز چھیہ یمن ہندس اندس پیٹھ ہلکہ مصوتہ چھہِ تتھ چھہ ہیجلۍ وزن بہتر پاٹھۍ ساتھ دوان۔

ہیجلۍ وزنن تہ ماترا وزنن، ماترا وزنن تہ پیچیدہ ماترا وزنن، ہیجلۍ وزنن تہ پیچیدہ ماترا وزنن درمیان چھیہ اتفاقی برابری ممکن تکیازِ ماترا تہ ہیجلۍ چھہ نزدیکی تصور۔ ییتہِ اکھ ہیجل اکہ کھۅتہ زیادہ ماتراہن برابر ہیکہ ٲستھ تتہِ ہیکہِ اکھ ہیجل اکس ماترا برابر تہِ ٲستھ۔ پیچیدہ ماترا عروضچ اکھ خاصیت چھیہ یہ زِ یہ چھہ ہیجلۍ تہ سادہ ماترا وزن تہِ شامل کران یمہِ کنۍ یہ "وۅپر” ٲستھ تہِ سانین زبانن ہندِ خاطرہ "لگہار” چھہ۔ ہیجلۍ وزنک تعلق اوس سانین واکھن تہ وژنن سیتۍ، اگر یم صنف زانہہ کالۍ سٲنس ادبس منز دوبارہ لیکھنہ آیہ تہ سانہ عصری شعرہ اظہارک وسیلہ بنییہ، ممکن چھہ پیچیدہ ماترا وزن یکسر مشرٲوتھ ما ییہ ہیجلۍ عروض دوبارہ بارسس۔ یوٚت تام نہ یہ سپدِ یمیک سیٹھا کم امکان چھہ، توٚت تام روزِ ہیجلۍ عروض کینژن مخصوص وزنن ہندس صورتس منز پیچیدہ ماترا عروضس تٲبیا۔

وزنن ہنز پارۍ زان (5): سادہ ماترا وزن

کینژن زبانن منز چھیہ وزنچ بنیاد نہ ہیجل تہ نہ تاکید بلکہ ماترا (mora)۔ یعنی یمن زبانن منز چھہ یکسان ماترا تعداد ورتٲوتھ شاعری منز آہنگ پیدہ کرنہ یوان۔ ماترا کہ تصورچ زانکاری کرون اسۍ تعریف کرنہ بجایہ یتھہ پاٹھۍ حاصل۔

(1)ہیجلٮن ہنزہ گۅڈہ آوازہ چھیہ نہ ماتراہن منز گنزرنہ یوان۔ یعنی مثالہِ پاٹھۍ ‘جر’ تہ ‘جار’ لفظن ہند جیم /ج/چھہ نہ ماترا ماننہ یوان۔

(2) ہیجلیک تھوٚنگ اگر ژھوٚٹس مصوتس پیٹھ مشتمل آسہِ، سہ چھہ اکس ماترا برابر تہ اگر زیٹھس مصوتس پیٹھ مشتمل آسہِ تیلہ چھہ دۅن ماتراہن برابر۔ یعنی ‘جر’ لفظک ژھوٚٹ مصوتہ زبر/اَ/ چھہ اکس ماتراہس برابر تہ ‘جار’ لفظک زیوٹھ مصوتہ یعنی الف مد/آ/ چھہ دۅن ماتراہن برابر۔

(3) ہیجلچ پوٚت آواز تہِ چھیہ اکس ماتراہس برابر۔ یعنی ‘جر’ تہ ‘جار’ لفظن ہند پتم /ر/ چھہ اکس ماترا برابر۔ یمن دۅن لفظن ہند ماترا تعداد چھہ یتھہ پاٹھۍ:

لفظ گۅڈہ آواز تھوٚنگ پوٚت آواز کل ماترا
جر ج زبر ر
ماترا X 1 1 2
جار ج آ (ا +ا) ر
ماترا x 2 1 3

یہ گژھہِ یاد تھاون زِ اکھ زیوٹھ مصوتہ چھہ دۅن ژھۅٹین مصوتن برابر تصور کرنہ یوان۔ مثلا ‘جار’ لفظک زیوٹھ مصوتہ /آ/ چھہ دۅن الفن یعنی دۅن زبرن برابر ماننہ یوان۔

(4)اگر ہیجلس منز اکہِ کھۅتہ زیادہ پوٚت آوازہ آسن (عموما مصمتن ہنز جورۍ)، تم چھیہ زہ ماترا گنزرنہ یوان۔ مثلا ‘مست’ لفظس منز چھہِ پتہ کنہِ زہ مصمتہ /س/ تہ /ت/ یکوٹہ ، یم دۅن ماتراہن برابر چھہِ۔ امہِ لفظک ماترا تعداد:

لفظ گۅڈہ آواز تھوٚنگ پوٚت آواز پوٚت آواز کل ماترا
مست م زبر س ت
ماترا x 1 1 1 3

ماترا وزن ہیکہِ سادہ تہِ ٲستھ تہ پیچیدہ تہِ۔ سادہ ماترا وزنن منز چھہ ہیجلۍ وزنکۍ پاٹھۍ خالص تعدادہ سیتۍ آہنگ پیدہ کرنہ یوان۔ ہندی زبانۍ ہند مقبول وزن چوپایی چھہ سادہ ماترا وزنچ مثال۔ اتھ وزنس منز چھہ پریتھ پد (مصرعہ) شراہن (16) ماتراہن برابر۔ وچھو بنم پریژھ تہ امچ تقطیع:

ایک راگ سے رہتی گاتی
چلے رات دن کہیں نہ جاتی

ایک راگ سے رہتی گاتی =   16   ماترا
12 12 2 11 2 22
چلے رات دن کہیں نہ جاتی =   16   ماترا
1 2 12 11 1 2 1 22

دۅشونی مصرعن منز چھیہ ماترا تعداد برابر مگر ماتراہن ہنز چھیہ نہ مصرعن منز کانہہ خاص ترتیب یمہ کنۍ سادہ ماترا وزنن منز پدۍ قایم چھہ نہ گژھان۔

سادہ ماترا وزن چھہ ہندی علاوہ واریاہن ہندوستانۍ زبانن منز ورتاونہ یوان۔ یہ ورتاون واجینۍ بیاکھ زبان چھیہ جاپانۍ۔ اتھ زبانۍ منز چھہِ ماترا اصطلاح پاٹھۍ haku یا onji ونان۔ عام طور چھہ جاپان نیبر یہ زاننہ آمت زِ امہِ زبانۍ ہنزِ شعرہ ذٲژ ہایکوہس منز چھیہ پانژھ ہیجلۍ، ستھ ہیجلۍ، پانژھ ہیجلۍ ترتیب۔ مگر حقیقتا چھیہ امچ ترتیب پانژھ ماترا، ستھ ماترا، پانژھ ماترا۔ ییتہِ نس روزِ نہ ماتراہو مطابق اکہ جاپانۍ ہایکوہچ تقطیع دلچسپی نش خالی۔اسۍ دمون ہایکو انگریزی اچھرن منز۔ ماتراہن ہند ژھین ییہِ ہایفن سیتۍ ظاہر کرنہ۔

na-ra ma-na-e
shi-chi-do-o ga-ra-n
ya-e za-ku-ra

اتھ منز چھیہ خاص کر دوٚیم لٲن توجہس لایق۔ اتھ منز چھہِ ضرورتہ مطابق ستھ ماترا، مگر پانژے ہیجلۍ۔ ہایکوہچ دوٚیم لٲن گژھہِ ستن ماتراہن برابر آسنۍ۔ گۅڈنکہِ لفظک ٲخری ہیجل چھہ doo یس دۅن ماتراہن(do-o) برابر چھہ۔ یتھے پاٹھۍ چھہ دوٚیمہِ لفظک ٲخری ہیجل ran دۅن ماتراہن (ra-n) برابر

کاشرس منز سادہ ماترا وزنہ چہ مثالہِ خاطرہ وچھون کہن (11) ماتراہن ہند یہ لل واکھ:

کُس ڈنگہِ تہ کُس زاگہِ
2 12 1 2 12 11
کٚس سر وترِ تیلی
2 2 12 22 11
کُس ہرس پوزِ لاگہِ
2 21 12 12 11
کُس پرمہ پد میلی
2 12 2 22 11

پیٹھمہ پریژھہِ ہندس چوپایی وزنس پیٹھ وچھون یہ لل واکھ:

تلہ چھے زیس تے پیٹھہ چھکھ نژان
ونتہ مالہِ وۅندہ کیتھہ پژان چھے
سورے سۅمرتھ ییتۍ چھے مۅژان
ونتہ مالہِ ان کیتھہ رۅژان چھے

تلہ چھے زیس تے پٮٹھہ چھکھ نژان 16 ماترا
11 2 2 2 11 2 1 2 1
ونتہ مالہِ وۅندہ کٮتھہ پژان چھے 16 ماترا
2 1 12 11 1 1 1 2 1 2
سورے سۅمرتھ ییتۍ چھے مۅژان 16 ماترا
2 2 22 2 2 1 2 1
ونتہ مالہِ ان کٮتھہ رۅژان چھے 16 ماترا
2 1 12 2 1 1 1 2 1 2

وچھو امہِ واکھہ کین کینژن لفظن ہنز ماترا تفصیل:

لل دیدِ ہندِ واکھہ کین کینژن لفظن ہند ماترا تعداد

کل ماترا

دوٚیم ہیجل

گۅڈنیک ہیجل

لفظ
پوٚت آواز تھوٚنگ گۅڈہ آواز پوٚت آواز تھوٚنگ گۅڈہ آواز
إ ل زبر ت تلہ
2 1 x 1 x
إ ٹھ ی پ پیٹھہ
2 1 x 1 x
إ د زبر وۅ وۅندہ
2 1 x 1 x
إ تھ   1 ی ک کیتھہ
2 1 x 1 x
زیر ل آ (ا+ا) م مالہِ
3 1 x 2 x
پیش+زیر     2 چھ چھے
2 2 x
زبر+زیر   3 ت تے
2 2 x
إ ت ن زبر و ونتہ
3 1 x 1 1 x
س زیر+پیش ز زیس
3 1 2 x
کھ پیش چھ چھکھ
2 1 1 x
تۍ   4 زبر ی ییتۍ
2 1 1 x
ن زبر ان
2 1 1
ن آ(ا+ا) ژ زبر پ پژان
4 1 2 x 1 x
ن آ(ا+ا) ژ ۅ م مۅژان
4 1 2 x 1 x
ن آ(ا+ا) ژ ۅ ر رۅژان
4 1 2 x 1 x
تھ اِ ر م ۅ س سۅمبرتھ
4 1 1 x 1 1 x

(1) دوچشمی اچھر چھہِ اکۍ سے مصمتس پیٹھ مشتمل۔ (2) "چھے” لفظس منز چھہِ تھوٚنگس منز زہ مصوتہ یتھ ڈپتھانگ dipthong ونان چھہِ۔ پیش تہ زیر۔

(3) "تے”لفظس منز تہِ چھہِ تھوٚنگس منز زہ مصوتہ یعنی ڈپتھانگ۔ زبر تہ زیر۔ اتھ لفظس ہیکہِ نیم مصوتہ /ی/ سیتۍ تہِ یتھہ پاٹھۍ تقطیع سپدتھ: /ت+ زبر+ ی/۔ امہِ تقطیع کنۍ تہِ چھہ یہ دۅن ماتراہن برابر۔ (4) یہ پوٚت آواز چھیہ نہ دۅن مصمتن پیٹھ مشتمل، بلکہ اکس مصمتس پیٹھ یتھ منز اوٚڈ یے /ت/ صمتچ تالریت palatalizationہاوان چھہ۔ /تۍ/ چھہ مفرد تالرۍ مصمتہ۔

ماترا وزن سمجنہ خاطرہ کرۍ میہ یم واکھ پیش، حالانکہ یمن واکھن ہنز یہ ماترا برابری چھیہ اتفاقی تکیازِ یمن واکھن ہند بنیادی وزن چھہ ہیجلۍ وزنے۔ یتھے پاٹھۍ چھیہ کینژن واکھن ہنز تاکیدی برابری مدنظر کینژن واکھن منز تہ پورہ کاشرِ شاعری منز تاکیدی وزن آسنک دوکھہ لوٚگمت۔

اردو ہندی یس منز مستعمل بحر متقاربکۍ نام نہاد مزاحف وزن چھہِ دراصل ماترا وزنے یم اکہ خاص طریقہ ورتاونہ یوان چھہِ۔ یم خاص وزن یمن اردو والیو بحر میر تہِ ناو کوٚرمت چھہ، چھہ کاشرس منز رفیق رازن ورتاومتۍ۔ اکہ غزلک ماترا تجزیہ چھہ پیش:

سانہِ شہارہ چھہِ قبرستانکۍ ہی آثار
12 121 1 2222 2 122 23
شامہ پتے انہراے کراں چھہ نہ کانہہ بیمار
12 21 122 21 11 2 122 23
اندرہ چھِوا توٚہۍ بٲژ گرکۍ سٲری محفوظ
12 21 2 12 21 22 122 23
نیبرہ میہ وچھمو تۅہہ تہِ چھہ وسۍ پیومت دیوار
12 1 22 11 1 1 2 22 122 23
تاپھ چھہ شامس تام دوان انسانس برٮم
12 1 22 12 121 222 2 23
دورِ چھہ باساں سٮکھ تامتھ گاہے سبزار
12 1 22 2 22 22 122 23
اسۍ چھہِ مسافر یارب اسہِ تتھۍ وتہِ کُن لاگ
2 1 221 22 11 2 11 2 12 23
یتھ وتہِ ترٮن ترٮن دۅہن چھیہ روزاں مشکنۍ دار
2 11 2 2 21 1 22 22 12
یا گوٚو تاپھ عدالت وانن منز ہلکارۍ
2 2 12 221 22 2 122 23
یا تھووکھ سنگین قلاین منز شہجار
2 22 122 221 2 122 23

رفیق راز چھہ اتھ اردو والین ہنزِ پیروی منز 12 ماترا + 10 ماترا (کل 22 ماترا) مانان یس غلط چھہ۔ اردو والۍ چھہِ دراصل اتھ افاعیلن منز (عربی عروض کین پدین منز) گنڈنچ کوشش کران۔ رفیق رازن تہِ چھہِ امہ وزنکۍ شیہ رکن مانۍ متۍ، حالانکہ اتھ وزنس منز چھہ نہ رکنن ہند کانہہ خاص دخل۔ امہ وزنک آہنگ چھہ اتھ بے محل رکن بندی ییرہ والان۔ یہ چھہ بنیادی طور سادہ ماترا وزن یتھ نہ پدین منز گنڈنچ کانہہ خاص ضرورت یا جواز چھہ۔ پدۍ یا افاعیل یا رکن بندی چھہ آہنگ کہ دوٚگن معیارک جواز پیدہ کران مگر یمن وزنن منز چھہ نہ ٹاکارہ پاٹھۍ پدین ہند کانہہ مکرر نمونہ۔

امین کاملن چھیہ 1970 پیٹھے عربی وزنن ہندۍ افاعیل ژٹۍ ژٹۍ لیکھنچ سفارش کرمژ۔ واضح چھہ زِ اتھ سفارشہ پتہ کنہِ چھیہ یہ بصیرت زِ یم وزن چھہِ ژکہِ ماترا وزن تہ یہند یہ کردار چھہ افاعیل ژٹۍ ژٹۍ لیکھنہ سیتی نوٚن نیران۔ اتھ موقفس کٔر تمۍ "میون عروضی سوچ” مقالس منز مزید وضاحت آوازن ہندِ مقابلہ حرفن ہند تصور رٔٹتھ یتھ اسۍ زیادہ انزۍ منزۍ چھہِ۔ تمۍ کرۍ افاعیلن ہندۍ حرف یلہ، بند تہ نتھۍ قسمن منز تقسیم۔ یہ چھیہ دراصل افاعیلن ہنز ماترا تقسیم۔ سہ چھہ اکھ ماترا والین حرفن یلہ آواز ونان، زہ ماترا والین حرفن بند آواز ونان تہ نتھۍ حرفن (مثلا نار، اسمان، سوچ لفظن ہندۍ /ر/، /ن/ تہ /چ/) ہنزِ آوازِ تہِ اکھ ماترا گنزراوان۔ کامل سندین عروضی مقالن منز چھیہ آوازِ، آہنگس تہ لیہ زیادہ اہمیت۔ سہ چھہ نہ قطعا عروضس روایتی تصورن تہ اصطلاحن ہندِ ذریعہ پیش کران۔ حقیقت چھیہ یہ زِ تسندۍ عروضی تجربہ تہِ چھہِ روایتی عروضی ہنرمندی ہنزِ نمایشہ بدلہ مخصوص مقصدن تہ ضرورژن تحت امکاناتن ہندۍ بر کھولان۔ (بحوالہ میون مضمون "کاشرس منز عروضی تجربن ہنز اہمیت”)

وزنن ہنز پارۍ زان (4): تاکیدی ہیجلۍ وزن

wazan

کینژن زبانن منز چھہ وزن اکی آنہ تاکیدی تہ ہیجلۍ۔ ہیجلۍ، تکیازِ اتھ منز چھہِ ہیجلۍ گنزراونہ یوان۔ تاکیدی، تکیازِ اتھ منز چھہ تاکید تہِ گنزراونہ یوان۔ ہیجلین ہند تعداد چھہ مختلف وزن (یعنی مصرعن ہند زیچھر) تہ تاکید چھہ پدین ہنزہ مختلف ترتیبہ مشخص کران۔ امہِ دوٚگن معیارہ کنۍ چھہ یہ وزنہ نظام پیچیدہ۔

انگریزی زبان چھیہ امہ قسمک وزن ورتاوان۔

مثالہِ پاٹھۍ نمون الیکزانڈر پوپ سنزِ نظمہِ Elegy to the Memory of an Unfortunate Lady ہند یہ بند۔

Foot 5 Foot 4 Foot 3 Foot 2 Foot 1
were clos’d ing eyes -thy dy reign hands -By fo
compos’d cent limbs -thy de reign hands -By fo
a-dorn’d ble grave -thy hum reign hands -By fo
gers mourn’d -by stran nou’d and -gers ho -By stran

اتھ بندس منز چھہ ایامبک پوٚد iambic foot ورتاونہ آمت یمیک مطلب یہ چھہ زِ یہ پوٚد چھہ دۅن ہیجلین پیٹھ مشتمل۔ گۅڈنیک ہیجل چھہ تاکیدہ روٚس تہ دوٚیم تاکیدہ وول۔ تاکید والۍ ہیجلۍ چھہِ تلہ رکھہِ علاوہ بولڈ یعنی مۅٹین حرفن منز دنہ آمتۍ۔

پدین ہندۍ چھہِ واریاہ قسم۔

دۅن ہیجلین پیٹھ مشتمل پدۍ چھہِ دۅن قسمن ہندۍ۔ ایامبiamb تہ ٹراکی trochee۔ ایامب چھہ گۅڈنیک ہیجل تاکید روٚس تہ دوٚیم تاکید وول۔ ٹراکی چھہ گۅڈنیک تاکید وول تہ دوٚیم تاکید روٚس۔

بیاکھ قسم چھہ ترین ہیجلین پیٹھ مشتمل۔ اتھ اندر چھہ اناپیسٹ anapaest پوٚد یوان یتھ منز گۅڈنکۍ زہ ہیجلۍ تاکید روٚس تہ تریم تاکید وول چھہ۔ بیاکھ پوٚد چھہ اتھ اندر یوان ایمپھیبراک amphibrach یتھ منز گۅڈنیک ہیجل تاکیدہ روٚس، دوٚیم تاکید وول تہ تریم تاکیدہ روٚس چھہ۔ تریم پوٚد چھہ اتھ منز ڈیکٹل dactyl یوان یتھ منز گۅڈنیک ہیجل تاکید وول تہ باقی زہ تاکید روٚس چھہِ۔

ایامبک پوٚد چھہ زیادہ مقبول۔

پوپ سندین پیٹھمین مصرعن منز چھہِ پانژھ پدۍ، یمہ کنۍ پینٹامیٹر pentameter ناو پیوس۔

ایامبک پینٹامیٹرس منز چھیہ پانژن پدین منز پانژھ ہیجلۍ جورِ آسان یمن منز دوٚیم دوٚیم ہیجل تاکیدی چھہ۔ تاکیدی ہیجلۍ وزنن منز چھہِ پدۍ تہِ گنڈتھ تہ ہیجلۍ تہِ گنڈتھ۔

اتھ وزنس منز چھہ ہیجلۍ پدین منز گنڈنک جواز تکیازِ یم پدۍ چھہِ پانہ آہنگک اکھ نمونہ/ التزام پیدہ کران۔

پدین ہندی پاٹھۍ چھہِ وزن تہِ واریاہ قسمن ہندۍ۔ اسہِ چھہ پتاہ زِ پینٹامیٹر چھہ پانژن پدین ہند وزن۔

اکہ پدِ کس وزنس یس سیٹھا نایاب چھہ چھہِ مانو میٹر monometer ونان۔

دۅن پدین ہندس وزنس چھہِ ڈای میٹر diameter  ونان۔

ترین پدین ہندس وزنس ٹرای میٹر trimeterتہ ژۅن پدین ہندس وزنس ٹیٹرا میٹر tetrameter ونان۔

شٮہ، ستھ تہ ٲٹھ پدین ہندین وزنن چھہِ ہیکسا میٹرhexameter، ہیپٹا میٹر heptameterتہ اوکٹا میٹرoctameter ونان۔

پینٹا میٹر چھہ زیادہ مقبول۔

انگریزی زبانۍ ہند تاکیدی آہنگ اگرچہ امہِ کہ تاکیدی ہیجلۍ عروضچ بنیاد فراہم کران چھہ، تاہم چھہ یہ لفظن ہندِ عام بول چال کہ تاکید نش انحراف تہِ کران۔ یعنی عروضی تاکید چھہ نہ لسانی تاکیدس سیتۍ ہمیشہ مطابقت تھاوان۔

وچھون ملٹن سند یہ مصرعہ۔

and night sures day -that mea the space Nine times

اتھ منز چھہ گۅڈنیکے لفظ nineتاکیدہ روٚس ییلہ زن عام بول چال مطابق اتھ پیٹھ تاکید گژھہِ آسن۔

وۅنۍ وچھون اسۍ کیٹس سنزِ نظمہِ The Fall of Hyperion منزہ بنم مصرعہ۔

dis- tinct mer are -the drea et and -The po

یہ نظم تہِ چھیہ ایامبک پینٹامیٹرس منز وننہ آمژ۔ اتھ مصرعس منز چھہِ زہ لفظ and تہ are تاکید سان ورتاونہ آمتۍ (یا پرنۍ پیوان) ییلہ زن عام بول چالس منز یم غیر تاکیدی لفظ چھہِ۔ پوپ سندس ژورمس مصرعس منز تہِ چھہ تریمس پدس منز and لفظ تاکید سان پرن پیوان۔

گویا اتھ وزنہ نظامس منز چھیہ زبانۍ ہندس فطری عام بول چال کس تاکیدس مقابلہ کنہِ حدس تام مصنوعیت۔ یہ انحراف چھہ نہ صرف یمن دۅن مصرعن منز بلکہ چھہ یہ انگریزی شاعری منز سیٹھا عام۔

حقیقت چھیہ یہ زِ پریتھ کانہہ وزنہ نظام چھہ زبانۍ طرزاوان یعنی stylize کران۔ وزنہ نظامن ہند یہ طرزاون تہ یہ مصنوعیت چھیہ نہ کمزوری بلکہ یمن ہنز اکھ خاصیت یۅس پٮٹھے بانہ نثرس تہ شاعری منز روایتی طور ظاہری امتیاز قایم کران چھیہ، دویمین لفظن منز پرن والۍ تہ لکھن والۍ سندِخاطرہ اکھ شعری ماحول پیدہ کران چھیہ۔

تاکیدی ہیجلۍ عروضس منز چھہ آہنگک دوٚگن معیار ورتاونہ یوان یمہ کنۍ یہ پیچیدہ وزنہ نظامن منز شامل چھہ۔ یعنی اتھ عروضس منز چھہ اکہ طرفہ پدین ہند تعداد آہنگک معیار بنان تہ بییہ طرفہ یمن پدین منز ہیجلین ہنز تنظیم تہ تاکید۔ راہی تہِ چھہ روایتی کاشرِ شاعری پیٹھ تاکیدی ہیجلۍ عروض کہ آہنگک دوٚگن معیار منطبق کرنچ سفارش تہ کوشش کران۔ انگریزی زبانۍ ہندس بول چالس منز چھہ تاکیدی آہنگ ییلہ زن کاشرس منز یژھ کانہہ کتھ چھیہ نہ۔ یعنی اسۍ چھہِ نہ جملہ کین اڈین لفظن پیٹھ لسانی طور زیادہ زور تراوان تہ اڈین پیٹھ کم۔ لہذا چھہ امہ قسمک تاکید ژینن تہ اتھ پیٹھ دٔرتھ پدۍ بندی تہ تتھ پیٹھ اتفاق سانہ خاطرہ ناممکن۔ کاشرین بٲتن ہنزِ راہی سنزِ پدۍ بندی منز چھیہ نہ تاکیدی ہیجلۍ عروض کین پدین برعکس کانہہ تنظیم، ترتیب یا ہشر میلان۔راہی یس چھہ پدۍ بندی ہند خیال شاید شفیع شوق نہ یمہ بیانہ پیٹھہ ووٚتھمت:

"اکس زور دار آوازِ تہ بییس زوردار آوازِ درمیان ہیکن اکہِ پیٹھہ ژور لۅژہ آوازہ تہِ ٲستھ۔ یۅہے لِکھہ چھہ کاشرین واکھن منز تہِ باسان۔” (شفیع شوق، شیخ العالم تہ تمۍ سند زمانہ، ص ۲۳)

وچھو بنمہِ واکھچ راہی ینۍ پدۍ بندی:

تلہ چھے زیس تے پیٹھہ چھکھ نژان
ت ت تم تم تم ت ت تم ت تا م
ونتہ مالہِ وۅندہ کیتھہ پژان چھے
تم ت تم ت ت ت ت ت ت تام تم
سورے سۅمبرتھ ییتۍ چھے مۅژان
تم تم تم تم تم تم ت تام
ونتہ مالہِ ان کیتھہ رۅژان چھے
تم ت تم ت تم ت ت ت تام تم

یمن پدین ہند تجزیہ چھہِ بیہ جوڑ۔ یعنی تجزیکۍ یم نمونہ چھہِ اکھ اکس نش مختلف۔(ت ت تم) چھہ (تم تم) یا (ت ت ت ت) یا( ت تام) نش آہنگہ کنۍ مختلف۔ یمن چھہ نہ پانہ وانۍ کانہہ ہشر یمہ کنۍ اصل واکھس منز آہنگ چہ بیہ ربطی ہند دوکھہ لگتھ ہیکہِ۔ لہذا چھیہ نہ یمن پدین ہنز یہ تجزیاتی تنظیم امہ پدۍ بندی ہند معیار بنان۔ اگر فرض کرو زِ پریتھ مصرعس منز چھہِ ژور تاکید برابر وقفن پیٹھ ، یہ پدۍ بندی کیا چھیہ تمہ مزید ہاوان؟ پدۍ بندی ہند مقصد کیا چھہ؟ شاید چھہ یہ زانن ضروری زِ تاکید چھہ ہیجلس سیتۍ تعلق تھاوان۔ یعنی تاکید چھہ ہیجلچ ملکیت۔ مثلا "ونتہ مالہِ ” لفظن منز چھہ تاکید یمو منزہ کُنہِ اکہ لفظہ کس اکس ہیجلس پیٹھ فرض کرُن۔ تاکید ہیکہ نہ اکی ساتہ دۅشونی لفظن ہندین ژۅشونی ہیجلین پیٹھ ٲستھ۔ اگر اسۍ پریتھ مصرعس منز ژور تاکید چھہِ تصور کران تم گژھن برابر وقفن پیٹھ ژۅن ہیجلین پیٹھ آسنۍ۔ تاکیدس اندۍ پکھۍ باقی ہیجلۍ یا لفظ کتھ بنیادس پیٹھ کروکھ اسۍ پدین منز تقسیم؟ انگریزی شاعری منز چھیہ یہ تقسیم ہیجلۍ تعداد کس بنیادس پیٹھ کرنہ یوان۔ امی چھہِ اکس مصرعس منز اکی قسمکۍ پدۍ ورتاونہ یوان۔ مثلا ایامبک پوٚد یعنی دۅن ہیجلین پیٹھ مشتمل پوٚد۔ اگر اکس مصرعس منز پانژھ تاکید مانوکھ (پینٹامیٹر) ، اتھ منز گژھن تیلہ پانژھ ہیجلۍ جورِ آسنہِ (ایامبک ہیجل)۔ تہِ زن گوٚو پریتھ تاکید وٲلس ہیجلس سیتۍ بیاکھ اکھ غیر تاکیدی ہیجل۔ مگر راہی سنز پدۍ بندی منز چھہِ (تمۍ سندِ تجزیہ مطابق) اڈین پدین منز زہ ہیجلۍ، اڈین منز تریہ، اڈین منز ژور۔۔۔نثرس تہِ چھیہ امہ قسمچ پدۍ بندی ممکن۔ اگر نہ پدۍ تخلیقی generative آسن تمن ہند جواز کیا چھہ؟

میہ ٲس پیٹھمہ واکھچ پدۍ بندی اکس مضمونس منز فارسی عروضی ارکانو سیتۍ یتھہ پاٹھۍکرمژ، یہ ہاونہ خاطرہ زِ فارسی عروض چھہ ہیجلۍ وزنن تہِ کۅم کران۔

تلہ چھے زیس تے پیٹھہ چھکھ نژان
فعلن (2) فعلن (2) فعلن (2) فعول (2)
ونتہ مالہِ وۅندہ کیتھہ پژان چھے
فعلن (2) فعلن (2) فعول (2) فع (1)
سورے سۅمبرتھ ییتۍ چھے مۅژان
فعلن (2) فعلن (2) فعلن (2) فعول (2)
ونتہ مالہِ ان کیتھہ رۅژان چھے
فعلن (2) فعلن (2) فعول (2) فع (1)

راہی چھہ "تلہ چھے” لفظن منز تریہ(3) ہیجلۍ تصور کران ییلہ زن یمن منز حقیقی طور زے (2) ہیجلۍ چھہِ۔ یتھے پاٹھۍ چھہِ تس "وۅندہ کیتھہ” لفظن منز ژور (4) ہیجلۍ باسان ییلہ زن یمن منز تہِ زے (2) ہیجلۍ چھہِ۔ امۍ سنزِ اتھ غلط ہیجلۍ تقسیمہ پتہ کنہِ چھہ تحریری لفظ تہ تحریری لفظہ کس بنیادس پیٹھ یمن نفظن ہنز تصوری (ذہنی) ہیجلۍ تقسیم۔ مگر ییلہ اسۍ زبانۍ ہند ملفوظی کردار نظرِ تل تھاوو (یہے چھہ پریتھ عروضچ بنیاد) یمن لفظن ہنز حقیقی تقسیم چھیہ دۅن (2) ہیجلٮن منز گژھان۔

پیٹھمہ ہیجلۍ تقسیمہِ سیتۍ چھیہ وۅنۍ امچ پدۍ بندی تہِ سمج یوان یعنی زہ ہیجلۍ فی پوٚد، صرف دویمس دویمس مصرعہ کس ٲخرس پیٹھ صرف اکھ ہیجل۔سوال چھہ وۅنۍ زِ یمن پدین منز چھا تاکید تہِ موجود۔ امیک ژھوٚٹ جواب چھہ ییلہ نہ زبانۍ منز لسانی تاکید اوس تہ شعری وزنس منز کپارۍ آو؟ کاشر زبان چھیہ ہیجلیو سیتۍ وقفہ مینان، تاکید سیتۍ نہ۔ دوٚیم کتھ چھیہ یہ زِ مصرعہ ژۅن ٹکرن منز تقسیم کرُن چھیہ تقطیع یۅس دراصل فارسی وزنس (فعلن فعلن فعلن فع) پیٹھ دٔرتھ چھیہ۔یہ چھہ نہ واکھ پرنک کانہہ طریقہ ۔یعنی اسۍ چھہِ نہ واکھ یتھہ پاٹھۍ تھکھ دی دی پران (تلہ چھے # زیس تے # پیٹھہ چھکھ # نژان)۔ یہ گوٚو ‘ونہ وُن’۔ یہ گوٚو گیوُن۔ گیونک اکھ طرز۔ واکھ چھہ نہ گیون۔ وژنس تہ واکھس منز یۅس اکھ بٔڈ فرق چھیہ سۅ چھیہ یی زِ ییتہ وژن گیونک چیز چھہ، واکھ چھہ تحت اللفظ پرنک چیز۔ نتہ چھہِ فارم کہ لحاظہ دۅشوے لگ بگ کُنے چیز۔ چونکہ گیونہ خاطرہ گژھن اکہ کھۅتہ زیادہ بند آسنۍ، لہذا چھہ وژن واکھ چی توسیع۔واکھ پرنکۍ چھہِ حقیقتا زےطریقہ ممکن۔ اکھ گوٚو پورہ مصرعہ کُنہِ تھکہ ورٲے پرُن تہ بیاکھ گوٚو مصرعہ دۅن حصن منز باگ اکھ وقفہ ترٲوتھ پرُن۔ مثلا یتھہ پاٹھۍ:

تلہ چھے زیس تے      # پیٹھہ چھکھ نژان
ونتہ مالہ و‎ندہ کیتھہ # پژان چھے
یا (ونتہ مالہِ# وۅندہ کیتھہ پژان چھے)
سورے سۅمبرتھ # ییتۍ چھے مۅژان
ونتہ مالہِ ان کیتھہ # رۅژان چھے
یا (ونتہ مالہِ # ان کیتھہ رۅژان چھے)

بہرحال، فارسی عروضک یہ وزن فعلن فعلن فعلن فعول / فع چھہ دراصل ہیجلۍ وزن یس تمام روایتی کاشرِ شاعری ہنز بنیاد چھہ۔

وزنن ہنز پارۍ زان (3): تاکیدی وزن

م

تاکید چھہ کنہِ لفظس پیٹھ زور تراونہ خاطرہ ورتاونہ یوان۔مثلا: ‘راتھ ٲس سردی۔’

اتھ جملس منز چھہِ تریہ لفظ۔ اگر سون مراد یہ آسہِ زِ سردی چھیہ نہ از بلکہ ٲس راتھ، تیلہ تراوو اسۍ یہ جملہ ادا کرنہ وزِ ‘راتھ’ لفظس پیٹھ زور۔ اگر اسہِ یہ ونن آسہِ زِ اتھ منز چھہ نہ کانہہ شک زِ راتھ ٲس سردی، تیلہ تراوو اسۍ ‘ٲس’ لفظس پیٹھ زور۔ تہ اگر سردی ہنز شدت ہاونۍ مراد آسہِ، تیلہ تراوو اسۍ ‘سردی’ لفظس پیٹھ زور۔

جملہ کس کنہِ لفظس پیٹھ معنی کہ لحاظہ باقی لفظن مقابلہ زیادہ زور تراوُن چھہ واریاہن زبانن منز رایج۔ معنیس سیتۍ واٹھ آسنہ کنۍ ونو اسۍ اتھ معنوی تاکید۔ معنوی تاکید چھہ نہ وزنن ہنز بنیاد بنتھ ہیکان، تکیازِ امیک تعلق چھہ جملس سیتۍ تہ اکس جملس منز ہیکن نہ اکہ کھۅتہ زیادہ معنوی تاکیدہ ٲستھ۔ (راہی چھہ امی تاکیدچ مثال دتھ تاکیدی وزنک جواز پیش کران۔) البتہ کینژن زبانن منز چھہ جملہ کین اڈین لفظن پیٹھ زیادہ زور یا تاکید پیوان تہ اڈین کم یتھ معنی بجایہ زبانۍ ہندس آہنگس سیتۍ تعلق چھہ۔ اتھ ونو اسۍ لسانی تاکید۔ مثالہِ پاٹھۍ نمون انگریزی زبان۔ مثلا یہ جملہ:

They will liberate me tomorrow.

اتھ جملس منز چھہِ صرف زہ لفظ یمن پیٹھ تاکید چھہ۔ تاکید کنۍ چھہِ انگریزی زبانۍ منز دۅیہ قسمکۍ لفظ۔ اکھ قسم گوٚو تم لفظ یم جملک بنیادی معنی پیش کران چھہِ یعنی پیٹھمہِ جملکۍ liberate تہ tomorrow ، تہ بیاکھ قسم گوٚو تم لفظ یم جملک گرامر پیش کران چھہِ یعنی پیٹھمہِ جملکۍ They, will تہ me۔ گۅڈنکہ قسمکۍ لفظ یعنی اسم تہ فعل (صفت بیترِ تہِ) چھہِ تاکید والۍ تہ دوٚیمہِ قسمکۍ لفظ یعنی اسم ضمیر تہ حروف جار بیترِ چھہِ عام طور غیر تاکیدی۔

تاکیدی وزنن اندر چھہ شعرن منز لفظن ہند تاکید گنزرنہ یوان۔ یہ چھہ ہیجلۍ وزنکۍ پاٹھۍ سادہ وزن۔ ییتہِ ہیجلۍ وزنن منز ہیجلین ہند یکسان تعداد آہنگک اصول بنان چھہ، تاکیدی وزنس منز چھہ تاکیدن ہند یکسان تعداد آہنگ پیدہ کران۔

آرل سٹاین تہ جارج گریرسن ہویو یورپی محققو چھہ یہ خیال پیش کوٚرمت زِ کاشرِ شاعری منز ، واکھ ہیتھ، چھہ تاکیدی وزن ورتاونہ آمت، حالانکہ سانۍ زبان چھیہ نہ تاکیدی زبان۔ اتھ منز چھہ نہ لسانی تاکید یعنی جملن منز چھہ نہ اڈین لفظن پیٹھ زیادہ تہ اڈین پیٹھ کم زور تراونہ یوان۔ مگر گریرسن سندِ خیالہ چھہِ لل واکھن منز فی مصرعہ ژور تاکید برابر وقفن پیٹھ ورتاونہ آمتۍ۔ مثلا

آمہِ پنہ سدرس ناوِ چھیس لمان
کتہِ بوزِ دے میون میہ تہِ دی تاٰر
آمین ٹاٰکین پونۍ زن شمٰان
زو چھم بریمان گرہ گژھہ ہٰا

ہیجلین تلہ ( -) رکھ تراونہ سیتۍ چھہ پریتھ مصرعس منز ژورن جاین تاکید ہاونہ آمت۔ یمن لفظن یا لفظن ہندین حصن پیٹھ تاکید چھہ، تم چھہِ مقابلتہ زورہ سان یعنی پھورہ کہ تھزرہ سان پرنہ یوان۔  مگر تاکید چھہ نہ واکھن ہندِ وزنچ بنیاد۔ یعنی واکھن ہند تاکید چھہ نہ لسانی یا عروضی حقیقت تھاوان بلکہ چھہ یہ بقول امین کامل پرنک اکھ خاص طرز۔ حقیقت چھیہ یہ زِ واکھن منز تہِ چھہ بنیادی طور ہیجلۍ وزنے ورتاونہ آمت۔ مثلاوچھو امہ واکھچ ہیجلۍ تقطیع ۔

1 2 3 4 5 6 7 8
آمۍ پن سد رس ناوۍ چھس ل مان
کتۍ بوزۍ دے میون میتۍ دی تار
آ مٮن ٹا کین پونۍ زن ش مان
زو چھم برے مان گر گژھ ہا

گۅڈنکس تہ تریمس مصرعس منز چھہِ 8 ہیجلۍ تہ دوٚیمس تہ ژورمس مصرعس منز چھہ7 ہیجلۍ ورتاونہ آمتۍ، یوس اکثر واکھن ہنز وزنی ترتیب چھیہ ۔ سادہ تاکیدی وزنن منز چھہ نہ مصرعن منز ہیجلین ہند تعداد یکسان آسان، بلکہ چھہ ہیجلۍ تعداد کُنہِ ضابطہ ورٲے ہران/کم گژھان۔ مثالہ پاٹھۍ وچھون برونہہ کن کمنگس سنز مختصر نظم۔مگر واکھن منز چھہ ہیجلۍ تعداد یکسان۔ یہ چھہ تتھۍ وزنس منز ممکن یتھ منز ہیجلۍ گریند ورتاونہ آسہِ آمژ۔ کاشرس بول چالس منز چھہ لفظن پتہ کنہِ ینہ والۍ ژھوٚٹۍ ہیجلۍ (یعنی ژھوٚٹۍ مصوتہ : زیر تہ عینہ زیر) دباونک رحجان۔ اتھ دجحانس تحت چھہِ اکثر لوکھ یتھین لفظن مثلا "زبانہِ” بدل زبانۍ”، "شاعرییہ” بدلہ "شاعری”، "زندگیہ” بدلہ "زندگی” ، "نِشہ” بدلہ "نِش” تہ "بدلہ” بدل "بدل” بولان تہ لیکھان۔ یہ رحجان چھہ سانہِ شاعری تہ وزنس پیٹھ تہِ اثرانداز۔ پیٹھمس واکھس منز وچھو بنمین لفظن منز کتھہ پاٹھۍ چھہِ ٲخری ہیجلۍ دبان۔

آمہِ = آ+مہِ < آمۍ
پنہ = پ+نہ < پنّ
ناوِ = نا+وِ < ناوۍ
کتہِ = ک+تہِ < کتۍ
بوزِ = بو+زِ < بوزۍ
مٮہ تہِ = مٮہ+تہِ < میتۍ
گرہ = گ+رہ < گرّ
گژھ = گ+ژھ < گژھّ
دِیہِ = دِ+یہِ < دی

یمن لفظن منز چھہِ زیرِ یعنیِ[اِ] مصوتس پیٹھ مشتمل اند ہ ہیجلۍ ہلکہ تالرۍ تہ عینہ زیرِ یعنی [إ] مصوتس پیٹھ مشتمل اند ہ ہیجلۍ ہلکہ مشدد حالت پیدہ کران۔ وچھو یہ صوتی عمل بنمین مصرعن منز تہِ یم فارسی عروض مطابق وننہ چھہِ آمتۍ۔

قدم تہ سوٚدرہ طلاطم سمے تہ وتہ وٲناکھ (کامل)
و+تہ< وتّ

حسن نہ کنہِ تہِ ژۅاپارۍ حے تہ سین تہ نون (کامل)
ک+نہِ < کنۍ

اگر گرہست دیی موقعہ کانہہ تہ اسہِ کن آکھ (کامل)
ا+سہِ < اسۍ

یا پزِ نہ وۅں پشرُن یہ پنن زۅہرقہ واوس (راہی)
پ+زِ < پزۍ

یا لول تہ رتہ زول نتے د   ٕے تہ اماوس (راہی)
ر+تہ < رتّ

بییہِ کیا چھہ مدعا حسنک بییہِ کیا چھہ ندا عشقک (راہی)
ب+یہِ < بیۍ

پے آم دہلۍ گاشہِ ژندر کڈِ نہ بمن واش (عازم)
ک+ڑِ < کڈۍ

اچھہِ دارِ مثرر اوس اچھر ڈولہِ بٔرم راتھ (عازم)
ا+چھہِ < اچھۍ

تژھ تٍر یوان ٲس زِ رتھ شٹھہِ ہے رگن منز (عازم)
ش+ٹھہِ < شٹھۍ

وُنہِ اوس مٮہ حیرت تہِ رژھا خوف تہِ اتھۍ منز (راز)
وُ+نہِ < ونۍ

اتھۍ منز میہ کھژم کیف تہ پییہِ نندرِ زۅلا ہش (راز)
پ+یہِ < پیۍ

رژھرتھ چھیہ اگر تھونہِ تہ لگہِ نار حریرس (راز)
ل+گہِ < لگۍ

یہ گژھہِ یاد تھاون زِ خط کشیدہ لفظن ہندۍ ٲخری مصوتہ دباونۍ چھیہ نہ کانہہ عروضی مجبوری بلکہ یتھ پاٹھۍ میہ پیٹھہ کنہِ ووٚن کاشرِ بول چالک اکھ مخصوص صوتی عمل یس سٲنس پریتھ وزنہ نظامس منز تہِ نوٚن چھہ۔ اتھ صوتی عملس چھہ سانہِ زبانۍ ہندس بدلونس صوتی مزازس سیتۍ رشتہ یتھ کن امین کاملن یہ ؤنتھ اشارہ کوٚرمت چھہ زِ کاشرس آہنگس منز چھیہ نہ زہ ژھۅچہ آوازہ (یعنی زہ ژھۅٹۍ ہیجلۍ) اکس اکھ پتہ یوان تکیازِ یہ چھہ سٲنس مزازس خلاف۔یہ صوتی عمل چھہ زیادہ تر تمن لفظن منز سپدان یم دۅن ژھۅٹین ہیجلین پیٹھ مشتمل چھہِ۔

خالص تاکیدی وزنچ مثال دمو اسۍ E. E. Cummings سنزِ یمہِ نظمہِ سیتۍ۔

what if a much of a which of a wind (10)
gives the truth to summer’s lie; (7)
bloodies with dizzying leaves the sun (8)
and yanks immortal stars awry? (7)
Blow king to beggar and queen to seem (9)
(blow friend to fiend: blow space to time) (8)
— when skies are hanged and oceans drowned, (8)
the single secret will still be man… (9)

اتھ منز چھہِ فی مصرعہ ژور تاکید یم بولڈ یعنی مۅٹیو حرفو سیتۍ تہ تلہ رٕکھہ ترٲوتھ ہاونہ چھہِ آمتۍ۔ سیٍتی چھہ پریتھ مصرعہ کین ہیجلین ہند تعداد بریکٹن منز دنہ آمت۔ ظاہر چھہ زِ (واکھن برعکس)ہیجلین ہند تعداد چھہ نہ یمن مصرعن منز یکسان۔ البتہ چھہ تاکید یمن مصرعن منز یکسان طور بٲگرتھ یمہ کنۍ آہنگ پیدہ چھہ گوٚمت۔ یہ آہنگ چھہ تسندِ خاطرہ ژینن مشکل یمۍ سنز زبان تاکیدی آسہِ نہ۔

تاکیدی وزنن منز تہِ چھہ نہ ہیجلۍ وزنکی پاٹھۍ پدین یا ارکانن ہند عمل دخل۔ اتھ منز چھہ نہ لفظن یا ہیجلین ہند تعداد اہم بلکہ برابر وقفن پیٹھ ینہ وول تاکید یمہِ سیتۍ آہنگ پیدہ گژھان چھہ۔

یورپی محققن پتہ چھہ امین کاملن کاشرِ شاعری ہنزِ تاکیدی عروضی خصوصیژ کن یتھہ پاٹھۍ اشارہ کوٚرمت۔

"شاعر اوس کنہِ اصول تہ قاعدہ بدلہ محض پننیو کنو سیتۍ شعرن تقطیع (ژھینہ بندی) کران، یتھ منز سہ ساری کھۅتہ زیادہ اہمیت لفظن ہندِ تعدادہ بدلہ تہندس تلفظس پیٹھ دباو تراونس یا لمتھ لستھ ادا کرنس پیٹھ دوان اوس۔” (کۅنگ پوش، 1952)

اتھ اقتباسس منز چھیہ زہ کتھہ وننہ آمژہ۔ (1) کاشرِ شاعری ہند وزن چھہ نہ پیچیدہ۔ یعنی یہ چھہ کنہِ بیرونی اصول بندی بجایہ زبانۍ ہنزِ لفظن ہنزِ فطری ژھینہ بندی پیٹھ قایم۔  (2) اتھ منز چھہ نہ لفظن ہند تعداد بلکہ لفظن ہند دباو اہم۔

گۅڈنچہ کتھہِ پیٹھ شک کرُن چھہ مشکل تکیازِ یہ وزن چھہ لل دیدِ پیٹھہ احد زرگرس تام بلکہ نادمن، کاملن تہ راہی ین تہِ کنہِ اصول بندی ہند علم آسنہ ورٲے وجدانی طور ورتوومت۔ البتہ دوٚیم کتھ چھیہ بحث طلب۔ رحمن راہی ین چھیہ عروضس پیٹھ پننہ کتابہِ منز کاملنۍ یہے دوٚیم کتھ، یتھ پتہ کنہِ یورپی محققن ہندۍ بیان تہِ چھہِ، پنن مقالہ بنٲوتھ ورتاومژ۔ مگر تمۍ چھیہ اتھ سیتۍ سیتۍ کاملنہِ گۅڈنچہ کتھہِ برعکس یہ ہاونچ کوشش کرمژ زِ یہ وزن چھہ پیچیدہ اصول بندی ہند مظہر۔ اتھ سلسلس منز چھہ تمۍ یورپی محققن تہ شفیع شوق نہِ یتھ کتھہِ پیٹھ اعتبار کٔرتھ انگریزی زبانۍ ہند پیچیدہ وزنہ نظام اتھ پیٹھ منطبق کرنچ کوشش کرمژ۔

"کاشرین واکھن منز (چھہ) عروضک دارمدار انگریزی شاعری ہندۍ پاٹھۍ سۅرن ہندس زورس یا دباوس پیٹھ۔” (شفیع شوق، شیخ العالم تہ تمۍ سند زمانہ، ص ۲۳)=

اسۍ ہیکو یہ ؤنتھ زِ واکھن ہند بنیادی وزن چھہ ہیجلس پیٹھ تہ یمن ہند مخصوص طرزِ ادا چھہ تاکیدی تکیازِ واکھ تہ شروکۍ چھہِ نہ گیونہ یوان بلکہ پند، نصیحت تہ دانایی ہندِ شعری اظہار کہ طور تحت اللفظ وننہ یوان۔ لہذا اوس یہند طرزِ ادا خصوصی طور تاکیدی آسُن ضروری۔ واکھس برعکس چھہ وژُن خالص گیونک چیز تہ اتھ منزٲس نہ اتھ تاکیدی طرز اداہس کانہہ جاے۔ مگر دۅشونی فارمن ہند وزن چھہ ہیجلۍ وزن۔ واکھ چہ تہ وژنہ چہ اتھ فرقہِ کُن چھہ امین کاملن جوابن چھہ عرض پننہِ کتابہِ منز اشارہ کوٚرمت تہ یہ چھیہ اکھ اہم فرق۔

وزنن ہنز پارۍ زان (2): ہیجلۍ وزن

شت

ہیجلۍ وزنن منز چھیہ آہنگچ بنیاد ہیجلین ہندس یکسان تعدادس پیٹھ ۔ ہیجلۍ وزن سمجھنہ خاطرہ چھیہ ہیجلہِ کہ تصورچ زان ضروری۔یہ زان کرو اسۍ یتھہ پاٹھۍ حاصل:

زبانۍ ہنزہ آوازہ چھیہ موٚٹۍ پاٹھۍ دۅن قسمن منز باگرنہ یوان: مصمتہ (consonant) تہ مصوتہ (vowel)۔

مصمتہ چھیہ تمہ آوازہ یم ٲسس منز شہس بولن تانو سیتۍ کنہِ قسمک روٚٹ، ٹھوٚر یا دباو تراونہ سیتۍ بناونہ یوان چھیہ ۔مثلا /ب/، /ر/، /س/، /م/، /ی/، /ہ/ بیترِ۔

مصوتہ چھیہ تمہ آوازہ یمن ہندس پھورس منز شہس کانہہ ٹھوٚر یا دباو تراونہ چھہ نہ یوان بلکہ چھیہ ٲسہ وتھ بالکل یلہ حالژ منز آسان۔ کاشرس منز چھہِ 14 مصوتہ، یمن منز ستھ ژھوٚٹۍ تہ ستھ زیٹھۍ چھہِ۔  /اَ/، /اِ/، /اُ/، /أ/، /إ/، /وٚ/ تہ /ۅ/ چھہِ ژھوٚٹۍ مصوتہ۔ /آ/، /ای/، /اوٗ/، /ٲ/، /اٍ/، /او/ تہ /ۅا/ چھہِ زیٹھۍ مصوتہ۔

یموے مصمتہ تہ مصوتہ آوازو سیتۍ چھہِ ہیجلۍ ترتیب لبان۔ یمنے آوازن ہنزن لۅکچین تنظیمن یم اکۍ سے شہہ ژیلس منز بولنہ یِن چھہِ ہیجلۍ ونان۔ اکھ ہیجل ہیکہِ خالص مصوتس پیٹھ مشتمل ٲستھ یا ہیکہِ اتھ منز مصوتس بتھہِ یا پتہ یا دۅشونی اندن مصمتہ ٲستھ۔ ہیجلیک منزیم حصہ یس اکثر اکھ مصوتہ چھہ آسان چھہ ہیجلیک تھوٚنگ بناوان۔

زبانن منز چھہ ہیجلین منز تھوٚنگ آسن عام طور ضروری۔ گۅڈہ آوازہ چھیہ زبانن منز سیٹھا عام بلکہ چھیہ کینژن منز ضروری۔ پوٚت آوازہ چھیہ نہ ضروری۔ یمن ہیجلین منز پوٚت آوازہ چھیہ نہ آسان تمن چھہِ یلہ ہیجلۍ ونان تہ یمن منز پوٚت آوازہ آسان چھیہ تمن چھہِ بند ہیجلۍ ونان۔ ہیجلہِ چہ گۅڈہ تہ پوٚت آوازہ چھیہ عام طور مصمتہ آسان۔ مثالہِ پاٹھۍ نمون ہیجل "نور”۔ امچ گۅڈہ آواز چھیہ مصمتہ /ن/، امیک تھوٚنگ چھہ مصوتہ /و/ تہ امچ پوٚت آواز چھیہ مصمتہ /ر/۔ چونکہ اتھ ہیجلس منز چھیہ پوٚت آواز، لہذا چھہ یہ بند ہیجل۔ یلہ ہیجلچ مثال چھہِ لفظ "بہ” یا لفظ "ما”۔ یمن پتہ کنہِ چھہ نہ کانہہ مصمتہ۔ یم چھہِ مصوتس پیٹھ اند واتان۔ لفظ "بہ” چھہ مصمتہ /ب/ سیتۍ شروع گژھان۔ امچ دوٚیم آواز چھیہ مصوتہ /إ/۔ لفظ "ما” چھہ /م/ مصمتہ سیتۍ شروع گژھان تہ /آ/ مصوتس پیٹھ اند واتان۔

ہیجلۍ چھہِ اکثر لوٚتۍ تہ گوٚبۍ یا ژھوٚٹۍ تہ زیٹھۍ قسمن منز بٲگرنہ یوان۔ ژھوٚٹۍ ہیجلۍ چھہِ اکس مصمتس تہ اکس ژھوٚٹس مصوتس پیٹھ مشتمل آسان۔ مثلا یم لفظ چھہِ ژھوٚٹین ہیجلین ہنزہ مثالہ: [بہ]، [چھہ]، [زِ]، [تہِ]۔

زیٹھین ہیجلین منز چھہ ترییہ قسمکۍ لفظ یوان۔

(1)تم لفظ یہنز ترکیب( مصمتہ+ ژھوٚٹ مصوتہ + مصمتہ) چھیہ ۔ مثلا [بر]، [دب]، [کوٚر]، [زٕل]، [نٔر]، [کٔنۍ]، [کیُل]۔ (‘بر’ تہ ‘دب’ لفظن ہند ژھوٚٹ مصوتہ چھہ زبر یۅس اکثر لیکھنہ چھیہ نہ یوان۔)

(2)تم لفظ یہنز ترکیب ( مصمتہ+ زیوٹھ مصوتہ) چھیہ ۔ مثلا [ما]، [زو]، [تی]۔

(3)تم لفظ یہنز ترکیب ( مصمتہ+ زیوٹھ مصوتہ + مصمتہ) چھیہ ۔ مثلا [جار]، [زان]، [تیر]، [گور]، [چانۍ]، [پاوۍ]۔ (اوٚڈ /ۍ/ چھہ نہ الگ مصمتہ بلکہ امہِ برونہہ ینہ والہِ مصمتچ تالریت یعنی palatalization ظاہر کران۔)

یم تریمہِ قسمکۍ لفظ چھہِ زیٹھۍ پہن ہیجلۍ۔ فارسی عروض کنۍ چھہِ اسہ یمن منز زہ ہیجلۍ بوزنہ یوان (کیازِ ؟تتھ پیٹھ سپدِ بُتھہِ کتھ)۔ مگر یم چھہِ لسانی طور اکۍسے ہیجلس پیٹھ مشتمل۔

ہیجلۍ چھہِ زبانۍ ہندین لفظن ہندۍ تعمیری ٹکرہ تصور کرنہ یوان۔ یا ونو دوٚیمین لفظن منز زِ ہیجلۍ چھہِ پھورکۍ بنیادی رکن۔ لفظن ہنزِ ہیجلۍ ژھینہ بندی ہند چھہ زبان بولن والین غیر شعوری علم آسان۔ وچھو کینژن لفظن ہنز ہیجلۍ ژھینہ بندی۔

ہیجلۍ تعداد (کھوور کُن) 1 2 3 کل تعداد
لفظ   (بۅن کُن)
تن تن 1
دِتھ دِتھ 1
وسۍ وسۍ 1
پیوٚو پیوٚو 1
پوٚت پوٚت 1
یاد یاد 1
دراس دراس 1
کاوۍ کاوۍ 1
ویسۍ ویسۍ 1
بییہ بیۍ (اِ) 1(2)٭
کۅنگہ کۅنگ (إ) 1 (2)٭
پتہ پت (إ) 1(2)٭
کوفورہ کو فور (ہ) 2(3)٭
دنیا دن یا 2
دادین دا دین 2
دنیادار دن یا دار 3
کمزور کم زور 2
کریمکھ ک رے مکھ 3
مارۍمندس مارۍ من دس 3

(نوٹ: /یاد/ تہ /دراس/، /زور/ تہ /دار/ چھہِ اکس اکس ہیجلس پیٹھ مشتمل۔ چونکہ فارسی عربی عروضس منز چھہِ یم دۅن حصن منز ژٹنہ یوان اوہ کنۍ گژھہِ نہ یمن پیٹھ دۅن ہیجلین ہند مغالتہ گژھُن۔* یتھین لفظن ہندۍ ٲخری مصوتہ چھہِ تقطیع اندر بشمول فارسی عروض تراونہ یوان۔ اگرچہ یمن منز تحریر کہ لحاظہ تریہ ہیجلۍ تصور کرنہ یوان چھہِ، یم چھہِ حقیقتا دوٚنۍ ہیجلین پیٹھ مشتمل۔)

وۅنۍ وچھوکھ بنم شعر تہ یہنز ہیجلۍ حصہ بندی:

کژتاں عاشق گامتۍ متۍ
دنیا سورے دنیا دار

ساسن دادین تن دتھ دراس
اکۍ عشقن کوٚرنس کمزور

تارکھ نب پیوٚو ٹھس ٹھس وسۍ
یاد کریمکھ پوٚت شامن

یمن شعرن منز چھہِ دۅشونی مصرعن منز ستھ (۷) ہیجلۍ ورتاونہ آمتۍ:

1 2 3 4 5 6 7
کژ تاں عا شق گٲ متۍ متۍ
دن یا سو رے دن یا دار
سا سن دا دین تن دِتھ دراس
اکۍ عش قن کوٚر نس کم زور
تا رکھ نب پیوٚو ٹھس ٹھس وسۍ
یاد ک رے مکھ پوٚت شا من

بحر متقاربکۍ مزاحف وزن (مثلا پیٹھم اثلم: فعلن فعلن فعلن فع/فاع) چھہِ ژکہِ ہیجلۍ وزن۔ امہِ وزنک آہنگ ورتوو امین کاملن یسلہ پاٹھۍ۔ یہ آو تسندس لۅتہ وٲے، بیہ تکلف تہ طنزیہ اظہارس سیٹھا براہ۔ کاشرِ زبانۍ ہندس گفتاری یا خۅد کلامی ہندس آہنگس تہِ نکھہ آسنہ کنۍ ورتوو یہ وزن کاملس سیتۍ واریاہو شاعرو۔ مثلا یم غزل:

کھسوُن سریہِ تہ رامن راج
وسوُن سریہِ تہ راوُن دوٚد (نادم)

تارکھ وسۍ پییۍ لژھہِ گیہ لال
دِلہ یتھ گٹہِ منز ژے کینہہ زال (راہی)

اتہِ کیا چھے کلۍ تہرس پیٹھ
بۅن وس کٲر وُٹھی ونۍ واو  (کامل)

واوس کمۍ ؤٹھ از تاں کٲر
بہتر گوٚو دِتھ تھاونۍ دٲر (فراق)

یمن سارنی غزلن ہند وزن چھہ دراصل ہیجلۍ وزن۔ وژنن منز چھہ یۅہے ہیجلۍ وزن ورتاونہ آمت۔ یعنی یتھ اسۍ پنن عروض ونان چھہِ، سہ چھہ دراصل یوٚہے ہیجلۍ وزن یس واریاہن مشرقی کیو مغربی زبانن منز ورتاونہ یوان چھہ۔ ہیجلۍ وزن چھہِ سادہ وزن تکیازِ یمن منز چھہ ژھوٚٹین زیٹھین ہیجلین کنے قیمت۔ ہیجلین تہ ہیجلین منز چھیہ نہ کانہہ فرق کرنہ یوان۔ امہِ خصوصیژ کنۍ چھہِ نہ ہیجلۍ وزنن منز پدۍ آسان۔ یعنی ہیجلۍ چھہِ نہ مزید پدین منز گنڈنہ یوان۔ پدۍ چھہِ تمن عروضن منز یمن منز ژھوٚٹین تہ زیٹھین ہیجلین الگ مۅل مقررچھہ، یمہِ کنۍ آہنگس منز دوٚگن امتیاز قایم گژھان چھہ۔ ہیجلۍ وزنن منز چھہ پدین بجایہ تھکھ اہم، یس آہنگک خاص نمونہ تہ تنوع قایم کران چھہ مثلا وژنکۍ ژھوٚٹۍ مصرعہ۔ یتھ شاعری منز سارنی ہیجلین کنے مۅل مقرر آسہِ تتھ منز چھیہ آہنگچ بنیاد یہند تعداد بنان یعنی تتھ شاعری منز چھیہ مصرعن ہنز تنظیم مقرر ہیجلۍ تعدادہ سیتۍ ترتیب لبان۔  وۅنۍ کرو اسۍ حبہ خاتونہِ ہندس بنمس بٲتس ہیجلۍ وزنہ مطابق تقطیع:

کاوۍ ویہنم ارۍ ننہِ نیہے
از ییہ یار بہ ناوسے
کۅنگہ کوفورہ بییہ عنبرے
سندِ زلہ تن بہ ناوسے
مارۍ مندس ترہنہِ روٚستس
پارۍ لگس بہ ناوسے
سارۍ ترٲوتھ تس پتہ لجس
کیاہ کرہ ویسۍ بناوسے
(کلیات حبہ خاتون، ص 185)

ہیجلۍ وزنن منز چھہِ ہیجلین ہندِ تعدادہ علاوہ بندن یا مصرعن ہنز حصہ بندی تہ قافیہ بیترِ آہنگک نمونہ پیدہ کران یمہ کنۍ ہیجلۍ وزن شاعرن تہ پرن والین دۅشونی ہندِ خاطرہ ورتاوُن تہ پھِرُن آسان سپدان چھہ۔ ہیجلۍ وزنن منز چھہ نہ مصرعن منز ہیجلین ہندِ یکسان تعدادہ علاوہ کانہہ مخصوص التزام آسان۔ البتہ چھہ شعری فارمہِ منز یہند مخصوص التزام تنوع پیدہ کران۔ یہ التزام چھہ واکھن تہ وژنن منز ظاہر۔ مثلا واکھن ہند اکھ التزام مگر غالب التزام چھہ 8 ہیجلۍ، 7 ہیجلۍ، 8 ہیجلۍ، 7 ہیجلۍ۔ امہِ قسمک مصرعن ہند خاص التزام چھہ وژن فارمہِ منز تہِ ظاہر۔ چونکہ ہیجلۍ وزن چھہ نہ مزید پدین منز گنڈنہ یوان، لہذا چھہِ نہ اتھ وزنہ نظامس منز زیٹھۍ مصرعہ ممکن۔ اگر کُنہِ زبانۍ منز زیٹھۍ مصرعہ چھہِ تہِ (مثلا فرانسسی، اطالوی، اسپینی، بیترِ)، تم چھہِ یوان اکس مخصوص جایہ تھکھ ترٲوتھ دۅن حصن، اصطلاحی طور د‎ۅن hemistches منز پھٹراونہ، تہ یہ تقسیم چھہ مثلا گۅڈنکہ حصہ کس ٲخری لفظس پیٹھ تاکید تراونہ سیتۍ، یا قافیہ ورتاونہ سیتۍ نمایاں بناونہ یوان۔ سانۍ وژن فارم تہِ چھیہ نصف نصف مصرعن پیٹھ قافیہ ورتٲوتھ یہ ژھین نمایاں بناوان۔ مثلا وچھو حبہ خاتونہ ہند وژن بییہ اکہ لٹہِ۔ گۅڈنکین گۅڈنکین مصرعن پتہ کنہِ چھہ قافیہ (نٮہے/ عنبرے؛ روٚستس/لجس) یمن زیٹھین مصرعن ژھین تراوان یمہ کنۍ وژنچ فارم شکل رٹان چھیہ۔

 

1 2 3 4 5 6 7
کاوۍ وُیہہ نم أرۍ نِنۍ نے ہے
از یی یار بہ نا و سے
کۅنگ کو فور بیۍ عن ب رے
سندۍ زل تن بہ نا و سے
مارۍ من دس ترہ نہِ روٚس تس
پارۍ ل گس بہ نا و سے
سٲرۍ ترٲ وِتھ تس پت ل جس
کیا کر‎ ویسۍ بہ نا و سے

کاشرین ہیجلۍ وزنن منز چھہ ژھۅٹین ہیجلین ہند ورتاو کم یعنی تمن ہیجلین ہنز یم مصمتہ تہ ژھوٚٹس مصوتس پیٹھ مشتمل چھہِ۔ اتھ چھہِ زہ وجہ۔ اکھ یہ زِ ژھوٚٹۍ مصوتہ چھہِ اکثر لفظہ کس ٲخرس پیٹھ بول چال چہ صوتیاتی تبدیلی تحت حذف سپدان۔ دوٚیم وجہ چھہ وژن گیونچ روایت۔ گیونس منز چھہِ ژھوٚٹۍ مصوتہ ادا کرنۍ زیٹھیو مصوتو کھۅتہ مشکل۔ امہ خاطرہ گژھہِ پروفیشنل تربیت آسنۍ۔ یوٚہے وجہ چھہ زِ وژنس تہ باقی گیون بٲتن منز چھہ ژھوٚٹۍ مصوتہ زیٹھراونہ یوان۔

 

وزنن ہنز پارۍ زان (1)

یہ چھہِ اسۍ مٲنتھ زِ عروضچ بنیاد چھیہ نہ حروف مکتوبی بلکہ حروف ملفوظی ین پیٹھ۔ یمہ ساعتہ اسۍ یہ حقیقت تسلیم کران چھہِ ، اسۍ چھہ یکدم صوتیات کس میدانس منز قدم تراوان۔ صوتیات چھہ زبانۍ ہنزن آوازن ہند اکھ باضابطہ علم۔ سانۍ ادیب چھہِ زبانۍ ہنزہ آوازہ گنزراونس علم صوتیات زانان۔

یہ ونن زِ خلیلس کیا ٲس نہ صوتیاتچ زان چھیہ سراسر خلیل ناشناسی تہ لاعلمی۔ عربی زبانۍ ہند صوتیات چھہ دراصل حرف کس پیچیدہ، کثیر سطح تصورس منز پوشیدہ۔ یہ تصور سمجنہ خاطرہ گژھہِ لسانیات تہ عربی زبانۍ ہند باضابطہ علم آسن۔ خلیل اوس اکھ ماہر لسان تہ ماہر لسانیات۔ اردو تہ کاشرۍ شاعر تہ نقاد چھہِ نہ فاعلاتن فاعلات کہ گردانہ نیبر تس متعلق کہنی زانان تہ نہ زانن یژھان۔

شتکلاسیکل عربی زبانۍ ہندِ خاطرہ اوس نہ ہیجلیک بلکہ ماتراہک (mora)تصور زیادہ کارگر۔ یہ تصور چھہ امہِ کس عروضس منز تہِ بنیادی حیثیت تھاوان۔ یہ ونن زِ ” وزنک سنگ بنیاد چھہ ہیجل تہ خلیل نس عروضس منز چھہ ہیجل نظر انداز کرنہ آمت یس امہ کہ ناہنجار کنک وجہ چھہ” (راہی) چھیہ لاعلمی یمکۍ اسۍ سٲری شکار چھہِ۔۔ شعری آہنگ چھہ زبانۍ ہنزن خصوصیژن سیتۍ تعلق تھاوان، لہذا چھہِ وزن (وزنہ نظام یا عروض) تہِ یمن خصوصیژن مثلا تاکیدس، ہیجلس، ہیجلین ہندس ژھۅچرس زیچھرس، ماتراہن، تہ طرزِ اداہس (tone) اندۍ پکھۍ کھڑا کرنہ آمتۍ۔ یعنی وزنچ چھیہ نہ کانہہ آفاقی بنیاد۔ ییتہ کینژن زبانن منز ہیجل چھہ، کینژن منز چھہ تاکید، کینژن منز دۅشوے، ییتہ کینژن زبانن منز ماترا چھہ، کینژن منز چھہ طرزِ ادا۔ لہذا چھہ یہ تہِ ضروری زِ عروض علاوہ گژھہِ زبانۍ ہنزن خصوصیژن ہنز تہِ زان آسنۍ۔ یمن خصوصیژن ہند علم سپدِ تیلی حاصل ییلہ اسہِ زبانۍ ہنز ہیجلۍ تشکیل، صوتیاتی عمل تہ صوتیاتی تبدیلی ہندین تصوراتن ہندعلم آسہِ۔ امہِ خاطرہ چھیہ زہ ژور کتابہ پرنہِ ضروری۔ از کل چھہ یہ سورے علم انٹرنیٹس پیٹھ دستیاب مگر پرن وول گژھہِ آسن تہ سہ علم صحیح تناظرس منز سمجن وول گژھہِ آسن۔

ینہ والین پوسٹن منز کرو اسۍ کینژن اہم وزنہ نظامن ہنز زا ن صوتیات کین یمنے تصوراتن ہندِ ذریعہ پیش۔ کاشرس منز کُس یا کس کس وزنہ نظام چھہ ورتاونہ آمت تہِ زاننہ خاطرہ تہِ چھیہ یہ زان ضروری۔