وزن چھا شاعری ہندِ خاطرہ ضروری؟

وزن چھا شاعری ہندِ خاطرہ ضروری کنہ نہ؟ وزنہ نش چھہ مراد کانہہ تہِ وزن یس مختلف شعری روایژن منز مروج چھہ یا اوس، چاہے سہ پتہ ہیجلۍ وزن چھہ یا تاکیدی وزن یا سنسکرت تہ عربی شعری روایژن ہند پیچیدہ ماترا وزن۔

مییلہ جدید نقادو شاعری ہندۍ اہم عنصر نٔوس شعری ماحولس تہ تنقیدی تناظرس منز بدِ کڈنۍ ہیتۍ یعنی تم عنصر یمو سیتۍ شعر شعر بنان چھہ، تمو وُچھ زِ وزن اوس نہ امہِ رنگۍ کانہہ خاص کارنامہ انجام دوان۔ لہذا دوٚپ تمو منزہ اکثرو زِ وزن چھہ غیر ضروری۔ مگر واریاہن ادبی حلقن منز آو وزن شعری ہیژ ہندِ تمہِ سوٚتھرِ کین عنصرن منزگنزراونہ یمن منز استعارہ، تشبیہہ، علامت، رمز، کنایہ، بیترِ چھہِ۔حالانکہ وزن چھہ شعری ہیژ ہنزِ تنظیمہِ تہ ترتیبہِ ہندین تمن عنصرن سیتۍ تعلق تھاوان یمن منز مصرعہ بندی، بند یعنی شعری ہیژ اندر اندروزنچ اکایی یا ہیتی اکایی، مصرعہ ژھین، قافیہ چاہے اند قافیہ یا منز قافیہ، ردیف یا ووج، بیترِشامل چھہِ۔اکثر چھہِ اسۍ وزنکۍ پاٹھۍ شاعری ہندِ باپتھ قافیہ ردیف تہِ غیر ضروری مانان یہ مٔشرتھ زِ قافیہ ردیف تہِ چھہِ ہیژ ہندِ تنظیمی سوٚتھرِچہ ضرورژ۔ لہذا یہ ؤنتھ زِ یم چھہِ نہ شاعری ہندِ خاطرہ ضروری چھہِ اسۍ دراصل شاعری ہندِ خاطرہ ہیت غیر ضروری قرار دوان۔مگر اسہِ پزِ یہ فرق ذہنس منز تھاونۍ زِ غیرضروری گوٚو نہ مطلب غیر مناسب یا بے محل یا غیر متعلق۔ سانۍ سٲرے روایتی یا کلاسیکل شاعری چھیہ ہیژ ہنز شاعری۔ ہیژ ہیکو شاعری ہندِ خاطرہ غیر ضروری ؤنتھ مگر غیر متعلق ہیکوس نہ ؤنتھ۔یہ فرق چھیہ سیٹھا اہم ۔ شعری ہیت غیر ضروری قرار دنہ خاطرہ آیہ معقول دلیلہ پیش کرنہ مثلا یہ زِ عصری وجود تہ تجربک اظہار چھہ نہ روایتی ہیژن منز ممکن تہ ییلہ شاعری منز ہیت دوبارہ ورتاونہ آیہ خاص کر پوسٹ ماڈرن شاعرن ہندِ دسۍ یمو روایتی ہیژن ہنز تجدید کٔر تمو تہِ کرِ معقول دلیلہ پیش۔

یہ چھیہ حقیقت زِ جدیدیت آیہ شاعری منز اکھ زبردست انقلابی تبدیلی ہیتھ۔ اتھ تبدیلی پیوٚو بلینک ورس؍فری ورس ناو۔ سانین زبانن منزآزاد نظم۔ یہ چھہ جدید دورک اکھ زبردست دیت۔ یہ تبدیلی ٲس روایتی ہیژن نش ژلنچ اکھ وتھ۔شاعر ٲسۍ یمو روایتی بندشو نش آزاد گژھتھ شعری تجربن ہند اظہار کرُن یژھان۔ تکیازِ یمن ہیژن سیتۍ ٲسۍ شاعری ہندۍباقی عنصر تہِ مقرر گمتۍ مثلا ڈکشن، استعارہ، تشبیہہ، بیترِیمو منزہ نیبر نیرنہ خاطرہ ہیت ترٲوتھ ژھننچ ضرورت پییہِ۔ مگر امہِ آزادی باوجود رود وزن مکمل یا جزوی طور آزاد نظمہِ سیتۍ چالو۔ یوٚت تام نثری نظمہِ اتھ تہِ بالکل دکہ دیت۔ آزاد نظمہِ پکنوو وزن امہِ مۅکھہ پانس سیتۍ تکیازِ یہ رود ہیتی تنظیمہِ ہنزِ غیر موجودگی منز نظمہِ اکہِ ممکن انتشارہ نش بچاوان۔آزاد نظمہِ منز یتھ آہنگس اہمیت میج یُس عام بول چالک آہنگ اوس یا شاعر سند ذاتی آہنگ اوس، سہ اوس بہر حال زبانۍ ہندس پننس آہنگس پیٹھ دٔرتھ۔ امہِ کنۍ تہِ رود وزن پننہِ آزاد شکلہِ منز نظمہِ منز جاری۔ مگر وزنکہِ رسمی یا قاعدہ بند ورتاوہ نش کھتۍ شاعر آزاد نظمہِ منز بوٚٹھ۔روایتی ہیژن منز چھہ وزن باقی عنصرن سیتۍ رٔلتھ نہ صرف لفظن ہندِ تعلقہ بلکہ شعری تجربہ چہ عملہ منزتہِ سۅ کٲم انجام دوان یۅس کٲم مۅختہ مالہِ منزپن دوان چھہ یعنی وزن چھہ اکس ہیژ منز ورتاونہ ینہ واجنہِ زبانۍ تہ تتھ پتہ کنہِ کس تجربس ترتیب تہ تنظیم دِتھ تہ پانہ وانۍ میُل کٔرتھ مضبوط بناوان۔ یۅہے منطق تہِ رود وزنہ کہ تعلقہ آزاد نظمہِ منز جاری۔ یعنی جدید شاعرس اوس اکہِ طرفہ روایتی ہیژو منزہ نیبر نیرنک شوق تہ دوٚیمہِ طرفہ اکہِ نامعلوم انتشارہ کہ امکانک خوف یمہِ کنۍ تمۍ وزن مۅچھہ منز چیرہ رٔٹتھ تھوو۔

نثری نظم ہیچ نہ سانہِ شعری روایژ برونہہ کنہِ زیادہ برونہہ پٔکتھ۔ برسرآوردہ نظم نگار رحمن راہی تہِ چھہ تازہ ترین کتابہِ منز پننہِ نظمیہ شاعری ہندِ تعلقہ ونان:

"وزن چھہ مقداری تہِ ورتاونہ آمت تہ غیر مقدرای تہِ ۔۔۔تہ روایتی عروضہ نش چھہ انحراف تہِ سپدمت، تاہم چھہ نہ کانہہ تہِ نظم خالص نثری۔”

ےامہِ بیانہ تلہ چھہ باسان زِ یہ شاعرچھہ نہ نثری نظمہِ ہند قایل بلکہ چھہ کانہہ نتہ کانہہ وزن پننٮن نظمن منز ورتاوُن ضروری زانان یہ اعلان کٔرتھ تہِ زِ "شعرہ باوژ باپتھ یتھہ پاٹھۍ نہ ردیف تہ قافیہ لازمی ماننہ آمت چھہ تتھے پاٹھۍ چھہ نہ وزن تہِ امہِ چہ مولہ ماہیژ منز شامل گنزرنہ یوان۔” گویا یہ شاعر چھہ وزنس شاعری ہنزِ مولہ ماہیژ منز شامل نہ گنزرتھ تہِ پانس سیتۍ سیتۍ پکناوان۔ حالانکہ آزاد نظمہِ ہندِ خاطرہ چھہ نہ وزن ضروری بلکہ چھٮہ یہ نظم یمو روایتی بندشو نش آزادی حاصل کرنہ کہ غرضے وجودس منز آمژ۔ راہی چھہ نہ یہ وننہ خاطرہ تیار مگر بہ ونہ تمۍ سندِ طرفہ زِ اکثر نظمن منز ماترا تہ ہیجلۍ وزن ورتاونہ باوجود چھہ تسند اکھ کارنامہ یہ زِ تمۍ کٔر کاشرِ نظمہِ شاعر سندس ذاتی آہنگس سیتۍ زان تہ خالص نثری آہنگس پیٹھ تہِ لیچھن نظمہ مثلا ‘اکھ شبییہ’۔ اتھ نظمہِ منز چھہ نہ کانہہ مقداری، غیر مقداری، تاکیدی یا ہیجلۍ وزن متواتر یا جزوی طور تہِ ورتاونہ آمت۔ یہ نظم چھیہ صرف نثری آہنگ ورتاوان۔ وچھو امیک اکھ اقتباس:

زُوس جسمس ٲسس برژھہ بۅچھہ
کھونکھن نوٚمرتھ اوس میژِ آبس کنین کنڈین مشک ہیوان
لوٚٹ اوسس ڈلہ ونس ہوہس مزازہ وچھان

یتھے پاٹھۍ چھیہ باقی نظمہ مثلا ‘میہ نے زیو آسہِ ہے دزمژ’۔ امیک تہِ اکھ اقتباس:

سونچ کرہ ہا تہ ہیگلس دٔزم
تال قدم تلہ ہا تہ مارکسس پھٹِم پدۍ
دپہ ہا مول تہ دوٚپہم غاصب
ژھارہن موج تہ کٔرہم رسوا
رچھہن لولٔر تہ یم نم تہ دند کتہِ تھاوکھ
کٕنہ ہا دود تہ ہینہ والین اچھ لجمژ تالو
نے کس کرِ وۅنۍ گراو
نیستانے ییلہ اندہ وند دوٚد؟

راہی سندِ پیٹھمہِ بیانہ باوجود چھہ یمن نظمن منز نثری آہنگ۔ نادم ہیوٚک نہ ہیتی تجربو تہ تنوع باوجود یہ نثری آہنگ پیدہ کٔرتھ۔ تمۍ سنز اکے نظم ‘باراں کوٹ’ چھیہ اتھ کُن اکھ کوشش ۔ وچھو امیک آغاز:

کمرس منز ژاس
تہ باراں کوٹ کوٚڈم نالہ
اویزان ترووم کوٹہ کِلس پیٹھ
ہنگہ منگہ پھیورس پوٚت
تہ یڈ بٔرتھ نظرا کٔرمس
باسیوم زن چھُس بے
اتھ کوٹہ کِلس پیٹھ اویزان گومت

مگر نظمہِ منز چھیہ برونہہ کُن اتھ نثری آہنگس منزوزنچ روانی ننۍ نیران یتھ متقاربس یا ہیجلۍ وزنس سیتۍ واٹھ دِتھ ہیکو۔  کامل چھہ نظمن منز وزن تہِ ورتاوان تہ نثری آہنگ تہِ۔ سہ چھہ نظمن منزوزنہ باوجود نثری آہنگ خۅد کلامی یاکتھ باتھہِ ہند انداز تہ ڈرامایت ورتٲوتھ تہِ پیدہ کران۔ مثلا وچھو ‘بے وکھ’ نظمہِ ہند آغاز:

زٔر تہ کٔج خاموش راتھ
ٹھس ٹھس ٹھس
کتھ نہ باتھ
ترین برنزین ہند بے صبر اکھ انتظار
ییژ مستی؟
تڑ۔ تڑاخ
کُس سا چھو
سے یمس یوٚدوے ژیتس آسی زمانا اکھ سپد
ناد بوزتھ واد ہیو اندری کریوتھ=

کامل سنزہ لۅکچہ نظمہ چھیہ خاص طور خالص نثری آہنگ ورتاوان۔ وچھو ‘اُنظرُ ترانی’ نظمہِ ہند آغاز:

وُنندرۍ ساسہ نوومت زونہ گاش
ملرہ موٚت تھکتھ ژھینتھ پیومت سوٚدر
زنماتن ہندس؍تتھ شینہ پرنس تہ شہلۍ شہجارۍ
زُوِس تاں کیا سنا وٲتتھ ہیکا سریہِ پروِ برونہہ

یہ نثری آہنگ ورتوو باقی شاعرو تہِ پننہِ نظمہِ منزگاہے وزنہ سان تہ گاہے وزنہ ورٲے ۔ زیادہ مثالہ چھیہ نہ برونہہ کنہِ۔ تاہم وچھوکھ بنم اقتباس یم وزنہ بدلہ خالص نثری آہنگس پیٹھ دٔرتھ چھہِ:

سہ اوس نہ یوسف کینہہ
مگر کیریک قید اوسس ڈیکس لیکھتھ
سہ پیوس ویتراوُن
یوسفن ٲس گراو کرمژ
تمۍ ہیوٚک نہ شہتھ تہِ پننٮن باین ہند کیا ونہِ ہا
(سہ تہِ اوس یوسف۔ مظفر عازم)

الوند بالہ کھنگرو منزۍ
آوسیمژِ بجہِ وتہِ
رنیمژِ زونہِ ہندس زرد گاشس منز
سوٚت بتہِ زٲلتھ سیاہ شکتی مانن ہنز کُنی ہۅہراے
پنن دہ ہیتھ گنین ونن منز شریپان
(ترانژھ۔ شفیع شوق)

کاشرِ شاعری منزچھیہ کافی مثالہ موجود یم یہ کتھ عملی طور باوان چھیہ زِ نظمہِ ہندِ خاطرہ چھہ نہ وزن ضروری، مگر اگر ورتاونہ آو غیر مناسب تہِ چھہ نہ۔وزنہ کہ ضروری یا غیر ضروری آسنک بحث چھہ دراصل نظمہِ سیتۍ تعلق تھاوان مگر افسوس چھہ یہ زِ کشیرِ منز چھہ یہ بحث تتھہ پاٹھۍ پیش کرنہ یوان زن اسۍ یہ ونان چھہِ زِ غزلہ کہِ خاطرہ چھا وزن ضروری کنہ نہ؟ غزلس چھہِ دویہ قسمکۍ لوکھ پتہ۔ اکھ تم ابتدایی شاعر یمن نہ امہِ ورٲے بییہِ کینہہ اتھہِ یوان چھہ تہ بییہ تم نام نہاد نقاد یمو اکہِ نتہ بییہ رنگہ غزلچ مخالفت کٔرتھ تہ امہِ چہ کمزوری گنزرتھ ادبی اصلاح پسندی ہند الم نکھس تلمت چھہ۔حقیقت چھیہ یہ زِ سٲنس زمانس منز یُس تنوع شاعری منز اسہِ برونہہ کنہِ ہیتی تہ غیر ہیتی، وزنی تہ نثری، نوِ تہ پرانہِ ، جدت پسند تہ تواریخی شعور کس صورتس منز چھہ، سہ چھہ بلاشک سٲنس کلہم شعری تجربس مالدار بناوان۔ یمن منز چھہ نہ کانہہ مقابلہ یا ٹکر بلکہ چھہِ یم اکھ اکۍ سند مۅل ہرراوان۔ یہ چھہ ممکن زِ نظمہِ منز یم رنگ تہ یم تجربہ منتقل سپدن تم ما ہٮکن نہ غزلس منز منعکس سپدتھ تہ امیک وُلٹہ تہِ چھہ ممکن مگر اکھ کمتر زٲنتھ، بییچ مبالغہ آرایی چھٮہ اکھ غیر ادبی، غیر تنقیدی صورت۔ حقیقت چھیہ یہ زِ شیٹھ تہ ستتھ کٮن دہلین منز چھہ کامل سند غزل کاشرس منز نظمہِ مقابلہ زیادہ بہتر تہ شدتہ سان ہمعصر وجودک اظہار کٔرتھ پننس وقتس نزدیک یتھ کاشرِ شاعری ہند عصری لہجہ مشخص کران۔ یہ چھہ سہ کارنامہ یُس نادم تہ راہی سنزِ طاقتور نظمہِ لرِ لوٚر تمہِ وقتہ کاملن انجام دیت۔مگر یہ ٲس نہ غزلچ ہیت بلکہ اتھ ہیژ نسبت کامل سند سلوک تہ ورتاو، موادک نویر،ڈکشن، طنز، بیہ تکلف لہجہ، زبانۍ ہند غیر نمایشی ورتاو، عروضی تجربہ تہ تنوع، جدت پسندی ، واتنیار یمۍ یہ کارنامہ تمہِ وقتہ ممکن بنوو۔روایتی ہیژ ورتٲوتھ تہِ کوٚر کاملن پننہِ شاعری منز جدید سوچ، حسیت، تجربہ تہ ردعمل پیش۔ لہذا کیا روایتی ہیت تہ کیا آزاد یا نثری نظم اصل کتھ تہ بنیادی شرط چھہ شاعری یۅس دۅشونی صورژن منز ممکن چھیہ۔وزن چھہ غزلہ چہ تنظیمہِ ہنز اکھ ضرورت، مگر یوٚت تام نظمہِ ہند تعلق چھہ، وزن ورتاوُن نہ ورتاوُن چھہ شاعر سند ذاتی ترجیحی معاملہ۔

وزن تہ آہنگ

"سانۍ کن تہ ذہن ییلہ تم خالص کاشرۍ آسن، چھہِ نہ یمن وزنن ہندس آہنگس پورہ پورہ ساتھ ہٮکان دتھ۔”  (کامل، سون ادب 1976، ص 110)

وزن تہ آہنگ کہ تعلقہ چھہ امین کامل اتھ اقتباسس منز اکس اہم کتھہِ کُن حٮس دوان۔ سہ چھہ یمن منز فرق کٔرتھ آہنگس وزنچ بنیاد مانان۔ شاعری منز چھٮہ اتھۍ آہنگس اہمیت۔ عروضی بحث سمجنہ خاطرہ چھہ ضروری زِ وزن تہ آہنگس درمیان یۅس فرق تہ یس رشتہ چھہ تمن پٮٹھ ییہ غور کرنہ۔

wazanآہنگس چھہِ کن تہ ذہن فوری تہ آسانی سان ژینتھ ہٮکان، مگر امیک تعریف کرُن چھہ مشکل۔ تاہم ہٮکو اسۍ ؤنتھ زِ آہنگ چھہ زبانۍ ہندٮن مخصوص عناصرن خاص کر آوازن ہندِ باقاعدہ تہ یکسان تکرارہ ستۍ پیدہ گژھان یُس شاعری منز اکھ خاص اہمیت تھاوان چھہ۔ آہنگ ہیکہِ نثرس منز تہِ  ٲستھ مگر سہ بدِ کڈُن چھہ مشکل تکیازِ نثرہ چہ آہنگ چہ اکٲییہ یا امکۍ نمونہ آسن لازما زیٹھۍ تہ حدہ کھۅتہ زیادہ متنوع۔ نثرس مقابلہ چھہ شاعری ہند آہنگ ٹاکارہ پاٹھۍ یکسان آسان، آسانی سان ژیننہ یوان تہ اکثر شعوری طور طریقو پیدہ کرنہ یوان۔ مثلا

ارۍ نہ رنگ گوم شراون ہییے
کر ییے درشن دییے

اتھ شعرس منز چھٮہ گۅڈنی ؍ہییے، ییے تہ دییے؍ لفظن ہنز یکسانیت تہ تکرار قابل توجہ۔ امہِ علاوہ چھہ/ر/ تہ /ن/ آوازن ہند تہِ تکرار میلان۔ /شراون/ تہ /درشن/ لفظن ہنز صوتی یکسانیت تہ نشست تہِ چھہِ قابل غور۔ یتھے پاٹھۍ رنگ تہ گوم لفظن منز /گ/ آوازِ تہ درشن تہ دییے لفظن منز /د/ آوازِ ہند تکرار۔ یمو تمام لسانی تہ صوتی عناصرو ستۍ چھہ اتھ شعرس اندر آہنگ نوٚن نیران۔ گویا شعرہ کہ منظم وزنہ الگ یاعلاوہ تہِ ہیکہِ یکسان لفظن تہ آوازن ہندِ تکرارہ ستۍ آہنگ پیدہ گژھتھ۔ منظم وزن بارسس ینہ برونہہ یۅس شاعری قدیم زمانس منز مختلف قومن منز سپدان ٲس، تتھ منز اوس آہنگ زبانۍ ہندیو یتھوے عناصرو ستۍ پیدہ کرنہ یوان۔ تتھ شاعری منز اوس آہنگ پیدہ کرنک اصول ہشن آوازن تہ نحوی ساختن ہندس تکرارس پٮٹھ دٔرتھ۔ یہ گژھہِ یاد تھاون زِ پرانہِ زبانہ آسہ زیادہ تر گردان تہ تصریف واجنہِ زبانہ شاید یمہ کنۍ آہنگ پیدہ کرنک یہ ساختیاتی طریقہ کارگر اوس۔

ییلہ لفظ تہ لفظہ کٮن لۅکٹٮن حصن آہنگ کہ لحاظہ اہمیت ہیژن میلنۍ، آہنگ پیدہ کرنکۍ کم یا زیادہ منظم، پیچیدہ تہ نازک طریقہ آیہ وجودس۔ یم طریقہ ٲسۍ لازما قاعدہ بند تہ یمنے طریقن چھہِ اسۍ عام طور وزن ونان۔ وزن چھہ نہ آہنگک مترادف بلکہ شعری آہنگ ترتیب دنک، دریافت یا پیدہ کرنک اکھ منظم طریقہ۔ وزنن ہند ارتقا سپد شعری ہیژن ہندس ارتقاہس لرِلوٚر۔ یعنی ییژ ییژ شعری ہیت منظم سپز تیوت تیوت سپد شعری آہنگ تہِ منظم۔

قدیم شاعری ہندۍ پاٹھۍ چھٮہ نہ پتمہِ صدی ہنز نثری نظم تہِ آہنگ پیدہ کرنک منظم تہ پیچیدہ طریقہ ورتاوان۔ اتھ منز چھہ زیادہ تر لفظن تہ فقرن ہند تکرار میلان یمہِ ستۍ آہنگ پیدہ چھہ گژھان۔ لہذا چھہ نثری نظمہِ ہند تکرار تہِ زیادہ تر ساختیاتی۔

قدیم شاعری تہ نثری نظمہِ منزباگ تہ لرِ لوٚر چھہ دنیاہ چہ تمام معیاری شاعری منز آہنگ پیدہ کرنک اکھ نتہ بیاکھ، کم یا زیادہ منظم تہ قاعدہ بند طریقہ ورتاونہ آمت۔ یعنی وزن۔

آہنگس تہ وزنس منز چھٮہ نہ اکثر پاٹھۍ فرق کرنہ یوان شاید امہ کنۍ زِ آہنگک بیان کرن چھہ نہ آسان تہ امیک بیان چھہ وزنہ چیو معروضی اکاییو ستی ممکن سپدان۔ وزن چھہ شعرک آہنگ ترتیب دنک یا بیان کرنک طریقہ یُس تصوری طور شاعری ہندِ خاطرہ شاید ضروری چھہ نہ مگر شاعری ہنزن مخصوص ہیتی ترتیبن یعنی اصنافن یا فارمن (غڑل، مثنوي، بیترِ   )  ہندِ ہیتی تنظیمک لازم تہ ملزوم حصہ چھہ۔ یُتھے اسۍ ہیتی تنظیمن یا اصنافن نٮبر نیران چھہِ، وزنچ اہمیت چھٮہ کم گژھان تہ امچ جاے چھہ سہ آہنگ رٹان یتھ وزنہ چہ تنظیمہِ ورٲے غیر واضح تہ مبہم آسنہ کنۍ لازما زبانۍ ہندٮن ساختیاتی تہ صوتی عنصرن ہند سہارہ ہیوٚن پٮوان چھہ۔

نثری نظم کٲژا کامیاب روز، سہ چھہ الگ بحث۔

شاعری ہنز ہیتی اکایی ییژاہ لۅکٹ آسہِ، تیوتاہ چھہ تمیک آہنگ متاثر کران۔ سہ آہنگ قایم کرنہ خاطرہ چھہ نسبتا منظم وزن ورتاونک ضرورت پٮوان۔ یعنی غزلہ کہ شعرک آہنگ چھہ تمہِ کہ تاثرک اکھ اہم عنصر تہ سٮٹھا لۅکٕٹ ہیتی اکایی آسنہ کنۍ چھہِ نہ اتھ منز وزنہ رنگۍ زیادہ یلہ گی تہ تنوع ممکن۔ نظم یۅس امہِ کھۅتہ بٔڈ اکایی چھٮہ ہیکہ کافی یلہ گی تہ تنوع ورتٲوتھ۔ تمیک آہنگ چھہ نہ تیوتا فوری یوتاہ مثلا غزلہ کہ شعرک چھہ۔اس لیے ییژاہ بٔڈ ہیتی اکایی تیوتاہ چھہِ وزنس منز یلہ گی تہ تنوع ممکن۔ نثر  چھٮہ امچ مثال۔

آزاد نظم تہ وزن

آزاد نظم گیہ سۅ نظم یتھ منز روایتی فارمہ (غزل، وژن، رباعی، پابند نظم، قصیدہ، بیترِ) نش آزادی آسہِ، وزنچ کانہہ پابند ترتیب آسہِ نہ (کاشرس ارودس منز مانۍ تو کانہہ مخصوص وزن مفرد یا مرکب آسہِ نہ ورتاونہ آمت)، تہ ردیف قافیہ نش تہِ آسہِ آزاد۔ وزنچ پابند ترتیبہِ نش چھہ مطلب یہ زِ فارسی وزن چھہ گنڈتھ رکنی ترتیب تھاوان۔ مربع، مسدس، مثمن بیترِ۔ آزاد نظمہ منز آو اتھ گنڈتھ ترتیبہ برعکس کنہِ بحر ہند اکوے رکن تواتر سان ورتاونہ۔ مثلا کامل سنز "گتکہ باز” نظمہِ منز چھیہ اکی رکنچ گردان اندہ پیٹھہ اندس تام، یمہ سیتۍ امہ نظمہِ ہندِ خاطرہ مطلوب آہنگ پیدہ کرنہ آمت چھہ۔

ترتیب وار وزن ورتاونہ سیتۍ اوس نہ پابند نظمن منز عام بولچالک تہ گفتگوک آہنگ پیدہ گژھان، تہ یپارۍ ٲس یہ وقتچ تہِ ضرورت۔ لہذا آیہ تم رکن زیادہ پہن کاشرِ نظمہِ منز دہراونہ یم سانہ زبانۍ ہندس آہنگس سیتۍ زیادہ واٹھ کھیوان چھہِ۔

نادم تہ راہی چھہِ امی لحاظہ متقارب زیادہ ورتاوان۔ آزاد نظمہِ منز چھہِ زیادہ پہن متقارب تہ رمل بجرن ہندۍ سالم تہ مزاحف رکن ورتاونہ آمتۍ۔ راہی ین تہ نادمن لیچھہ کینہہ نظمہ یمن منز کانہہ عروضی رکن جزوی طور ورتاونہ آو یعنی اتی چھہ کانہہ مصرعہ یا مصرعک کانہہ حصہ پابندی سان اتھ رکنس پیٹھ پکان تہ اتی چھہ نہ۔ اکھ قدم اگر برونہہ پکو یمو عروضی ارکانو نیبر نیرو تہ خالص شہہ کہ تل تراوک آہنگ ورتاوو یہ بنہِ نثری نظم۔ پریتھ زبانۍ چھہ عروضی آہنگ وراے پنن تہِ اکھ آہنگ آسان، میہ باسان کاشر زبانۍ ہند آہنگ چھہ متقاربس نزدیک، لہذا کاشرِ آہنگہ لیکھنہ آمژ نظم آسہِ توتہِ متقاربس سیتۍ رلان۔ متقارب چھہ میون مطلب امچ اکھ مخصوص شکل یعنی فعلن فعلن۔

مرکب وزن مثلا فعولن فعلاتن کہ ورتاوہ سیتۍ چھہ عروضک اکھ مخصوص پیٹرن پیدہ گژھان، لہذا چھیہ نہ امہ قسمکۍ وزن آزاد نظمہ منز ورتاونچ گنجایش۔

پیش چھیہ میانۍ پننۍ اکھ نظم۔ میہ چھیہ نہ کانہہ مخصوص آہنگ ورتاونچ کوشش کرمژ مگر ۔۔۔۔۔:

گُرتہ کُل تہ گُر — منیب الرحمن

پتہ ییلہ کُلہِ پیٹھہ
گُر ووتھ بۅن
بۅنہ کنہِ اوس
اکھ ژرِ بچہ نیتھہ نون لوٹ گلنٲوتھ
اکھ گاڈ زیو مژرٲوتھ
تہ بییہ اکھ بیور گگرس سیتۍ ہینگ ملنٲوتھ
پراران
تمۍ تج دو
تمۍ دوپ پانو ییتہِ چھہ نہ کانہہ سیود
میانی عقلہِ کھستھ گوو کُل
تمہِ پتہ ووتھ کُل گُرِ پیٹھہ بۅن
بۅنہ کنہِ اوس
گُر تس پراران
بییہ اکھ ژرِ بچہ
بییہ اکھ گاڈ
بییہ اکھ بیور
بییہ اکھ گگُر
تہ بییہ اکھ کُل

کاشرِ شاعری منز تاکیدی عروضک نظریہ

Grierson
سر جارج گریرسن

جارج گریرسن ییلہ ہندوستان واپس گژھتھ لل دیدِ پیٹھ لیکھنہِ بیوٹھ، امس پیوو کاشرِ عروضک خیال۔ امۍ لیوکھ آرل سٹاینس یُس کشیرِ منز اوس۔ گریرسن تہ سٹاین ٲسۍ دۅشوے ہندوستانۍ زبانن ہندۍ عالم۔ یہند لسانیاتی علم اوس تمہ زمانہ کس رایج تقابلی تواریخی لسانیاتس سیتۍ تعلق تھاوان۔ یم ٲسۍ واریاہن زبانن واقف مگر کاشرِ بول چال کس حدس تام چھیہ یہنز زان باسان رژھ کھنڈ محدودے ٲسمژ۔ آرل سٹاینن لٲج پرژھہ گٲر کرنۍ مگر کانسہ ٲس نہ خبرے زِ وزن کیا چھہ۔ ساروے وونہس زِ اسۍ چھہِ امیک فیصلہ کُنہِ علمہ بجایہ پننیو کنو سیتۍ کران۔ لہذا لوگ نہ چارہ آرل سٹاینس پننیو کنو کاشر شاعری بوزنس۔ امۍ بلوو حاتم تلوونۍ تہ دوپنس گیو سا کاشرۍ بٲتھ۔ سہ گوو گیوان تہ سٹاین گوو اندازہ کران زِ یمن منز کیا وزن چھہ۔ حاتم ما اوس بٲتھے اوت گیوان، سہ اوس پورہ دلیل ونان۔ بہرحال، یم بٲتھ ٲسۍ نہ فارسی وزنس سیتۍ برابر رلان تہ نہ ٲسۍ ہندوستانۍ زبانن ہندس ماترا وزنس سیتۍ رلان، لہذا کور امۍ پننین کنن پیٹھ بھروسہ کٔرتھ فیصلہ زِ یمن بٲتن منز چھہ تاکیدی وزن۔ اتھ سند ژھانڈنہ خاطرہ ووت یہ کُنی دوِ ایس پی کالج کس پنڈت نیتانندا شاستری یس نش۔ شاستری ین کورنس تایید۔ امہ پتہ چھہ گریرسن تہِ پانہ کشیرِ تٔرتھ پننۍ پرژھہ گٲر کران مگر نوو کینہہ لبان چھہ نہ۔ گریرسنن ژھونڈ لل واکھن منز تہِ سے تاکیدی وزن یُس سٹاینس حاتم تلوانۍ سندین بٲتن منز میولمت اوس۔ یتھہ پاٹھۍ پیوو کاشرِ شاعری منز تاکیدی عروضک نظریہ تھنہ۔

سوال چھہ کاشرس منز چھا پزۍ پاٹھۍ تاکیدی وزن اوسمت؟ اگر چھہ اوسمت، سہ کتھہ پاٹھۍ ہیکون ثابت کٔرتھ؟ اگر چھہ نہ اوسمت، تیلہ کتھہ پاٹھۍ لوگ یمن ماہر لسانیاتن دھوکہ۔ یمن سوالن ہند جواب ژھانڈنہ خاطرہ پرژھہ بہ بیاکھ سوال زِ یمن ماہر لسانیاتن کوتاہ یقین چھہ اوسمت زِ کاشرِ شاعری منز چھہ تاکیدی وزن ورتاونہ آمت؟

aurel_stein
سر آرل سٹاین

سٹاین چھہ ونان ” میہ کور گریرسن سندس حکمس آمنا تہ صرقنا یمہِ مکمل احساسہ سان زِ میانہِ لسانیاتی تربیژ منز اوس نہ وزنیاتک کانہہ مخصوص مطالعہ شامل۔” اگر یہ انکسار چھہ، تیلہ چھہ یہ قابل رشک۔ اگر یہ اعتراف چھہ تیلہ تہِ چھہ یہ قابل رشک۔ بہرحال، پتہ چھہ ونان زِ بٲتھ بوزتھ ووتس یتھ نتیجس زِ یمن بٲتن ہند وزن چھہ محض تاکیدی ہیجلین ہندس تعدادس پیٹھ دٔرتھ، "تمہِ وقتہ تہِ ییلہ یمن ہند ڈھانچہ ظاہری طور ہندی وزنن ہندِ نمونہ مطابق چھہ۔” یعنی کینژن جاین چھہ امس ہندی یک مقداری وزن کٲم کران باسیومت۔ مزید چھہ ونان زِ یمن منز چھیہ کُنہِ ساعتہ برابر تاکیدن ہندِ اصولچ خلاف ورزی تہِ سپدان۔

وچھو گریرسن کیا چھہ ونان۔ "درجن واد بٲتن ہندۍ طویل تہ مفصل تجزین واتنووس نہ بہ یمہِ حقیقژ ورٲے کُنہِ حتمی نتیجس تام زِ تاکیدس چھہ اتھ منز اہم حصہ باسان۔ ییتہِ ہُتہِ چھہِ معروف وزنن ہندۍ آثار میلان مگر کُنہِ جایہ تہِ پکۍ نہ تم اکی وقتہ کینژو مصرعو برونہہ۔” یعنی گریرسنس چھہ نہ بدل کانہہ وزن یمن بٲتن منز مسلسل لبنہ یوان، لہذا چھہ تس تاکیدن ہند دخل باسان، خاص کر یہ خیال برونہہ کنہِ تھٲوتھ زِ سٹاین تہِ چھہ شاستری یس سیتۍ رٔلتھ اتھۍ نتیجس تام ووتمت۔ گریرسن چھہ امہ پتہ برونہہ کن لل دیدِ ہندین دۅن واکھن فی مصرعہ ژور تاکید لگٲوتھ ونان "اگرچہ تاکید وزنک کُنے معیار چھہ، کینژن بٲتن (مطلب واکھن) منز چھہ ہندوستانۍ تقطیع ہندین معروف طریقن ہند دور دراز صداے بازگشت تہِ برونہہ کن یوان۔” گریرسن سند اشارہ چھہ ہندی کس ماترا وزنس کن۔ امہ پتہ چھہ ونان "یتھے پاٹھۍ چھہِ کینہہ باقی بٲتھ (مطلب واکھ) فارسی یا ہندوستانۍ معروف وزنن ہندۍ آثار ہاوان۔” امہِ انتشارہ کنۍ چھہ گریرسن اکھ عجیب غریب نتیجہ کڈان یمیک ذکر برونہہ کن ییہ۔ فی الحال ونو زِ گریرسن تہ سٹاین سندۍ یم بیان چھہِ یمہ سوالک تشفی بخش جواب فراہم کران زِ کاشر شاعری ہندِ تاکیدی وزنہ چہ بنیاذ ہند کوتاہ چھہ یمن یقین اوسمت۔

عروضی سانچہ تہ غیر زحافی تنوع

مفعول فاعلات مفاعیل فاعلن (مضارع)
مفعول مفاعیل مفاعیل فعولن (ہزج)

عروضی وزن چھہ نہ زبانۍ ہند آہنگ بلکہ آہنگک اکھ مخصوص سانچہ۔ زبانۍ ہند آہنگ سیتۍ سیتۍ پکناونہ خاطرہ چھیہ یمن سانچن ہنزہ مختلف صورژہ مختلف زبانن منز مستعمل یا رایج۔ مثلا مضارعک یہ وزن چھہ فارسی یس منز ہزج کس وزنس مقابلہ یسلہ پاٹھۍ ورتاونہ آمت، کاشرس منز چھہ امیک الٹ۔ کُنہِ تہِ سانچس پیٹھ ہیکہِ کانہہ تہِ شاعر مشقہِ سیتۍ شعر ؤنتھ۔ ناممکن چھہ نہ کینہہ۔ یہ تہِ چھہ پوز زِ اکس شاعرس چھہ اکھ وزن ورتاونس زیادہ پہن وار یوان تہ بییس بیاکھ۔ مگر شاعر سنز یہ مشق تہ مہارت چھیہ نہ لازمی طور کُنہِ سانچہ کہ زبانۍ ہندس آہنگس سیتۍ ہم آہنگ آسنچ دلیل۔

کاشرس منز آو عروض محمود گامی سندِ وقتہ فارسی پیٹھے۔ فارسی والیو چھہ عروض نسبتا نرمی سان ورتوومت۔ یۅہے وجہ چھہ زِ سانۍ کاشرۍ شاعر تہِ رودۍ مہجورس تام امہِ عروض کس ورتاوس منز نرمی ورتاوان۔ ینہ پیٹھہ اسہِ اردوس سیتۍ تعلق سپد، اسہِ تہِ ہیژ عروضس متعلق سۅے شٹھگی ورتاونۍ یۅس اردو والین نالۍ چھیہ گمژ۔

پیٹھمہِ زہ کتھہ ذہنس منز تھٲوتھ پکو اسۍ اصل مسلس کن۔ میہ ووت واریاہ کال ونان زِ پیٹھم زہ وزن اگرچہ دۅن مختلف بحرن سیتۍ تعلق تھاوان چھہِ (مضارع تہ ہزج) مگر زحافہ لگۍ لگۍ چھہ یم دۅشوے اکھ اکس سیٹھا نزدیک آمتۍ، یوت زہ اکھ مصرعہ اگر اکس منز آسہِ تہ بیاکھ بییس منز ، آہنگس منز چھہ تنوعک احساس گژھان مگر مجروح گژھنک باس چھہ نہ لگان۔ نزدیک آسنہ کنۍ چھہِ اکثر شاعرن یمن منز گڑبڑ گژھان اگر تم رژھ کھنڈ تہِ غفلت ورتاون۔ یہندس گڑبڑس ونہ نہ بہ شعر پھٹن، البتہ ونہ بہ اتھ تنوع تہ یمہ کنۍ یہ مستحسن تہِ ہیکہِ ٲستھ۔ شعر پھٹن گوو ییلہ وزن مجروح گژھہِ ۔ اکھ مصرعہ اگر اکس وزنس منز آسہِ تہ بیاکھ بییس منز (بشرطیکہ تم آسن نزدیکی آہنگ) تتھ ونو نہ شعر پھٹن۔ امین کاملن چھہ اکھ غزل وونمت۔ مقطع چھس:
نالہ دتۍ رملن سریعن جامہ ژٹۍ
کاملنۍ وٲراگہ بیانی تہ اسۍ

اتھ غزلس منز چھہِ تمۍ دۅن بحرن (رمل تہ سریع) ہندۍ رکن فاعلاتن تہ مفتعلن رل کٔرتھ ورتاوۍ متۍ۔ کُنہ جایہ چھہ اکھ ورتاوان تہ کنہِ جایہ بیاکھ۔ اگر نہ کانہہ اتھ تقطیع کرنہِ بیہیہ، غزلک آہنگ چھہ نہ امہ قسمچ کانہہ ژینون دوان۔ دراصل چھہ کاملن ژیونمت زِ کاشرس منز چھیہ نہ ژھوٹ ماترا بدلہ زیٹھ ماترا ورتاونہ سیتۍ کانہہ بدآہنگی گژھان۔ یہ غزل چھہ تمیک ثبوت۔ وچھو کینہہ شعر:
بابہ آدم سۅرگہ سیلانی تہ اسۍ
پوشہ وُن اکھ عالما فانی تہ اسۍ
کیفہ نونک آولنۍ گردش تہ ہو
آنگنس پھوجمژ یہ ویرانی تہ اسۍ
سمیہ ٹھہراوک یہ ہندر آسماں
بتلہِ فضاہچ یہ روانی تہ اسۍ
سانۍ پروازن ستارن ہیوت خراج
واجہ ورٲیی سلیمانی تہ اسۍ
سون ازلی کھاتہ کمۍ مژروو وچھ
چون جمع خرچ زبانی تہ اسۍ

غزل پرتھ چھہ نہ آہنگ کہ مجروح گژھنک کانہہ باس لگان، حالانکہ اتھ منز چھہ زبردست تنوع۔ اتی چھہ 19 ماترا مصرعس منز تہ اتی چھیہ 18 حتی کہ 17 ماترا مۅژان۔ ماترا کم گژھنہ سیتۍ یا ہرنہ سیتۍ چھہ آہنگ مجروح گژھنک خدشہ روزان۔ مگر یہ غزل پٔرتھ چھا کُنہِ جایہ مصرعن ہنز روانی متاثر گژھان؟ اگر چھیہ نہ گژھان اسۍ کیازِ یم آزادی ورتاونس کھوژان؟ یژھہ آزادی چھیہ مختلف وزنن منز زحافن ہندِ بہانہ روا تھاونہ آمژہ۔ فاعلاتن (7 ماترا) ییلہ کینژن وزنن منز فعلاتن (بہ تحریک عین، 6 ماترا) ہیکہِ گژھتھ، فاعلاتن (7 ماترا) کیازِ ہیکہِ نہ مفتعلن (6 ماترا) گژھتھ؟ عروضی کتابہ تھاوۍ توکھ طاقچن پیٹھ۔

اسۍ ییلہ اکس وزنس منز فعلن فعلن (ماترا 22 22 = 8) چہ جایہ فعل فعولن (ماترا 12 221 = 8) کٔرتھ ہیکو، فاعلات (ماترا 1212 = 6) کیازِ ہیکہِ نہ مفاعیل (ماترا 1221= 6) بٔنتھ؟ عروضی کتابہ تھاوۍ توکھ ونہِ تہِ طاقچن پیٹھے۔

اسۍ چھہِ افاعیلن ہنزن شکلن سنان تتھ آہنگس نہ یمچ یم نمایندگی کران چھہ‏۔

مفعول فاعلات مفاعیل فاعلن (مضارع)
مفعول مفاعیل مفاعیل فعولن (ہزج)

یم فارسی وزن کیا چھہِ؟ ژکہ ماترا وزن، فرق چھیہ یہ زِ یمن منز چھیہ ماتراہن ہنز اکھ مخصوص ترتیب یۅس اہم چھیہ۔ وۅنۍ وچھو اسۍ یمن دۅن وزنن ہنزہ ماترا تاکہ افاعیلی شکلو بجایہ ییہ آہنگ برونہہ کن۔

122 1212 1221 212 (مضارع)
122 1221 1221 221 (ہزج)

دۅشونی وزنن منز چھہ ماتراہن ہند تعداد برابر یعنی 22 ماترا۔ دۅشونی وزنن ہند گۅڈنیک تہ تریم پود چھہ ہیوے۔ دویمس پدس منز چھہ ماترا تعداد برابر مگر ییتہِ اکس وزنس منز ماترا ہند ترتیب 1212 چھہ بییس منز چھہ 1221۔ یہ چھیہ ٹاکارہ فرق۔ مگر اگر اتھ تہِ وارہ پاٹھۍ سنو، امہ پدیک دویم حصہ چھہ ہوے: 12 (زہ تہ اکھ ماترا) ۔ فرق چھیہ گۅڈنکس حصس منز 12 چھہ 21 گژھان یعنی الٹ۔ وزنہ کس ورتاوس منز یہ انحراف چھا آہنگس متاثر کران؟ کنہ امہ سیتۍ چھہ تنوع پیدہ گژھان، سے تنوع یُس مختلف زحافات ورتاونہ سیتۍ پیدہ کرنہ یوان چھہ۔

وۅنۍ چھہ سوال ژورمہِ پدیک ۔ فاعلن/فعولن۔ وزنن منز کتھ ہوس پدس منز چھہِ زیادہ زحافہ تبدیلی واقع سپدان؟ ٲخری رکنس منز! کیازِ؟ تکیازِ اوت تام چھہ امہ برونہہ ینہ والین پدین منز آہنگ قایم آسان گومت تہ امہ ٲخری پدِ چہ تبدیلی سیتۍ چھہ آہنگ متنوع گژھان مگر خلل چھہ نہ پیوان۔ اگر فاعلن (212 = 5 ماترا) بدلہ فعولن (221 = 5 ماترا) ییہِ کانہہ بد آہنگی گژھہِ نہ۔

یہ گژھہِ نہ مشراون زِ عروضی سانچہ چھہ نہ اہم بلکہ سہ آہنگ یُس امہ سانچہ سیتۍ اسۍ شعرن منز پیدہ کران چھہِ۔ تتھ آہنگس منز اگر کانہہ تنوع یا تغیر پیدہ کرنہ ییہ سہ گژھہِ مستحسن زاننہ یُن۔

ٲخرس پیٹھ امہ مشاعرہ منزہ کم شعر آیہ میہ زیادہ پسند:

ّپھہہ وول واو آسہِ تہ قمرس تہِ پھورِ بولۍ
تاپس تہِ واپھ دیہ نہ اجازت تہ سوسنان

یتھ رٲژ ستھ چھیہ سانۍ یہاے ژانگۍ کرامات
کر تاپھ تراوِ زاپھ تہ کر ویگلہِ زمستان
مظفر عازم

برونہہ اوس بولبوش کراں لنجہ لنجہ پیٹھ
ازکل چھہ زیادہ نخل سکوتس تلے بیہان
رفیق راز

بعضے گناں گمانہ زِ کشکول چھم بدن
بعضے یہ خاکدان چھہ اسمانہ ہیور کھسان

شہزادہ گوو قتل تہ پری آسمان کھژ
رودے نہ کینہہ تہ کیازِ نہ وۅکلاں یہ داستان
شہناز رشید

خۅشبویہ کاروان یتین اوس خیمہ دتھ
تتھ جایہ نے چھہ پوش نہ بلبل نہ باغوان

لازم چھیہ تژھ پیپاس جگر آسہِ نارہ کھل
صحراوہ ناگہ راد یتھے چھا کھۅرو وزان
نذیر آزاد

زانہہ راتھ کھنڈ گزار یمن کھنڈرن اندر
ہاوے پنن وجارہ گومت خوابہ کاروان
نگہت صاحبہ

دزۍ دزۍ چھہ کُنہِ ژھیوان تہ ژھیوۍ ژھیوۍ چھہ کنہِ دزان
کتھ واوہ ہالہِ دل چھہ پننۍ گاشہ لے رچھان
الیاس آزاد

الیاس نش شعرس کٔر میہ رژھ کھنڈ تبدیلی معذرتہ سان۔

اچھا وچھو مضارع مثمن اخرب مکفوف محذوفس کتھہ پاٹھۍ چھہ سنطور واینہ یوان۔ یہ بوزان بوزان گژھہِ ہزج مثمن مکفوف محذوف تہ ذہنس منز انن!

ترنگرِ والین ہنز کاکۍ گی کِنہ لکہ شعریات؟

رینزس گیندم، رینزس گیندم
ببن اونم بازراے
شیشہ دارے پانے لویم
رم گیہ شیشس ہتے ہاے
بب ہے دپیم یہ کیا کورتھ
بہ ژھۅپہ ژھۅپے پھرس چاے

رحمن راہی چھہ "کاشرِ لکہ شاعری ہند تخلیقی کردار”  (مطبوعہ شیرازہ 6:29) مضمونس منز اتھ لکہ بٲتس تشریح کٔرتھ خبر کمن پیٹھ بیہ موقعہ یتھہ پاٹھۍ پننۍ ژکھ کڈان:

"کینہہ ترنگرِ والۍچھہِ یتھین نوزک لوہ پھیرین تہِ پٲترِس کھٲرتھ تولنچ کاکۍگی کران تہ گہے سکہ بند قافیہ بندی ہنز تہ گہے تارژہ تولچ کتھ تلان۔ اما تمن چھنا قدیم یونانین ہند یہ دوپ تہِ کنن گومت زِ وزن یا قافیہ چھہ نہ شاعری ہنزِ ٲڈرنہِ منز شامل۔ تہ مرزا غالبن یہ اعلان تہِ چھکھنا بوزمت زِ
 فریاد کی کویی لے نہیں ہے
نالہ پابند نے نہیں ہے۔”

اتھ جذباتی بیانس منز چھہ راہی قافیس تہ وزنس متعلق پننۍ نفرت ظاہر کران۔ افسوس چھہ یہ زِ امہِ لکہ بٲتہ چہ تشریح  منز چھہ سہ یوت آورنہ آمت زِ سہ  چھہ نہ اصل بٲتہ کس فارمس پیٹھ توجہ کٔرتھ ہیوکمت، نتہ زن گوژھ نہ سہ امہِ بٲتہ کہ حوالہ قافیہ تہ وزنہ کہ غیر ضروری آسنچ کتھ تُلن تکیازِ یوت تام قافیہ بندی ہند سوال چھہ، یہ بٲتھ چھہ ٹاکارہ پاٹھۍ پانہ ہیرہ پیٹھہ بۅن تام قافین منز غرق۔گۅڈنچی نظرِ چھہ امہ کس دویمس دویمس مصرعس منز غزلہ کی پاٹھۍ قافیہ ورتاونہ آمت: بازراے/ہاے/چاے (باقی وچھو برونہہ کن)۔ یوت تام وزنک سوال چھہ، اتھ منز چھہ ہیجلۍ (کاشر) وزن تہِ برابر پاٹھۍ ورتاونہ آمت۔ یعنی یمن دۅن چیزن راہی معترض چھہ تم دۅشوے چیز چھہِ امہِ بٲتہ چہ ٲڈرنہِ منز شامل۔

 

وزنچ ٲڈرن

1

2

3

4

5

6

7

8

رین

زن

گین

دم

رین

زس

گین

دم

ب

بن

او

نم

با

زہ

راے

 

شی

شہ

دا

رے

پا

نے

لو

یم

رم

گے

شی

شس

ہ

تے

ہاے

 

بب

ہے

د

پیم

یہ

کیا

کر

رت

بہ

ژھۅپ

ژھو

پے

پھِ

رس

چاے

 

یہ چھہ بنیادی طور ہیجلۍ وزن تہ اکثر بٲتن ہندۍ پاٹھۍ چھہِ اتھ منز گۅڈنکس گۅڈنکس مصرعس منز ٲٹھ (8) تہ دویمس دویمس مصرعس منز ستھ (7) ہیجلۍ۔ اکثر ہیجلۍ وزنن منز چھہ ہیجلین ہند تعداد اہم، تمن ہنز ترتیب نہ۔ ترتیب چھیہ تمن وزنن منز اہم یمن منز ژھۅٹین تہ زیٹھین ہیجلین ہنز فرق اہم چھیہ۔ کاشرس ہیجلۍ عروضس منز چھہِ ژھوٹۍ تہ زیٹھۍ ہیجلۍ اکوے قیمت تھاوان۔ زبر، زیر، پیش یا بییہ کانہہ اعراب وول اوک اچھری لفظ یا لفظک ٹکرہ مثلا /ب/چھہ اکھ ہیجل، زہ اچھرہ والۍ ٹکرہ یا لفظ مثلا/زس/ تہِ چھہ اکوے ہیجل، تریہ اچھری ٹکرہ یا لفظ مثلا /راے/تہِ چھہ اکوے ہیجل، تہ ژور اچھری ٹکرہ یا لفظ مثلا /ژھۅپ/ تہِ چھہ اکوے ہیجل۔ یمن سارنی ہیجلین چھہ کاشرس ہیجلۍ عروضس منز کُنے مۅل۔ فارسی عروضس منز چھہ یمن الگ الگ مۅل مقرر تکیازِ تتہِ چھیہ ژھۅٹین تہ زیٹھین ہیجلین ہنز ترتیب اہم۔

سانۍ شاعری چھیہ دنیا چہ زیادہ تر شاعری ہندۍ پاٹھۍ فارمچ شاعری لہذا چھہِ اتھ منز فارمہِ سیتۍ تعلق تھاون والۍ عنصر موجود یمن منز قافیہ تہ ردیف تہ وزن تہ مصرعہ تہ شعر تہ ووج تہ بند تہ صنف چھہِ۔ یمہِ ساتہ اسۍ یمن بٲتن پیٹھ قلم تُلو اسۍ کرو ضرور تمن عنصرن ہنز کتھ یمو مطابق یم وننہ آمتۍ چھہِ۔ تتھ منز چھہ نہ کانہہ گۅناہ! سۅ چھیہ سانۍ شعری روایت یۅس سانہِ تمام لکہ شاعری احاطہ کٔرتھ چھیہ۔

دویم کتھ چھیہ یہ زِ دنیاہ کہ کُنہِ تہ تمدنکۍ لکہ بٲتھ چھہ قافیہ تہ وزن ورتاوان چاہے سہ وزن کُنہِ تہ نظامس تحت آسہِ یا خالص متوازیتس parallelismپیٹھ دٔرتھ آسہِ۔ یہ چھیہ پاپیولر شعریات، اتھ کیا کرِ کلاسیکل یونانۍ تنقیدی اصول زِ شاعری خاطرہ چھہ نہ وزن تہ قافیہ ضروری۔ تم ٲسۍ شاعری بدلہ تمہ وقتہ منظوم ڈراما لیکھان یمہ کس سیاقس منز تمو یہ کتھ کرمژ چھیہ۔ شیکسیپر تہ چھہ ڈراما لیکھان مگر یتتہ نس تاثر ہرراون چھس آسان قافیہ تہِ چھہ ورتاوان۔

 

بے بنیاد شہادت

راہی چھہ اتھ بیانس منز طنزک لہجہ رٔٹتھ مزید ونان زِ کینژن "ترنگرِ والین” (خبر یہ کمن کُن چھہ اشارہ؟) چھیہ نہ خبر زِ قدیم یونانیو چھہِ نہ قافیہ تہ وزن شاعری ہنزِ ٲڈرنہِ منز شامل کرۍ متۍ۔ راہی یس چھہ نہ شاید یہ معلوم زِ وزن تہ قافیہ چھہِ نہ براہ راست شاعری بلکہ شعری فارمن یا روایژن ہندۍ لوازمات۔ اگر یونانین ہند یہ خیال چھہ زِ شاعری ہندِ خاطرہ چھہِ نہ وزن تہ قافیہ ضروری تمیک مطلب گوو نہ یہ زِ سۅ شاعری کیا چھیہ نہ شاعری یتھ منز وزن تہ قافیہ ورتاونہ آمتۍ چھہِ یا وزن تہ قافیہ ورتاون یا تمن ہنز کتھ کرُن کیا چھہ گناہ۔  بییہ چھہ نہ یہ ضروری زِ یونانین ہند دوپ کیا ییہ اچھ ؤٹتھ ماننہ تکیازِ یہ چھہ نہ کانہہ خدایی بیان۔ کلاسیکل یونانین پتہ چھہِ دنیاہچہ تقریبا تمام تر شاعری (یونانۍ ہیتھ) وزن تہ قافیہ ورتاومتۍ۔ اگر  کلاسیکل یونانین ہندس دٔپس منز مطلق حقیقت آسہِ ہے، دنیا ہس منز آسہ ہے نہ بجن بجن زبانن ہندیو شاعرو وزن تہ قافیہ ورتاوۍ متۍ۔ غزل یا بییہ کانہہ روایتی فارم، سون وژن تہ لکہ بٲتھ چھہِ قافیہ تہِ ورتاوان تہ وزن تہِ تکیازِ یم زہ چیز چھہِ باقی عناصرن سیتۍ رٔلتھ یمن فارمن ہنز تشکیل کران۔

راہی چھہ غالبن شعر دتھ یہ رعب تراونچ کوشش کران زِ غالب ہوۍ بڈۍ شاعرن تہِ چھہ اعلان کورمت زِ وزن تہ قافیہ چھہِ نہ شاعری ہندِ خاطرہ ضروری۔ حالانکہ غالب سندس شعرس چھہ نہ وزن تہ قافیہ کس بحثس سیتۍ کانہہ تعلق۔ فریاد تہ نالہ یم دۅشوے چیز چھہِ ناہموار تہ بیہ ربط تہ بیہ ضبط۔ فن چھہ بندش، چستی تہ تہذیب منگان ۔بقول اقبال:

تا تو بیدار شدی نالہ کشیدم ورنہ
عشق کاریست کہ بے آہ و فغاں نیز کنند

راہی یتھ شاعرانہ زبان ورتٲوتھ نوزک لوہ پھیرۍ ونان چھہ، تم لوہ پھیرۍ چھہِ نہ فریاد تہ نالہ یا بیہ وزن  کریکہ نادک نتیجہ۔ یمن لوہ پھیرین ہنز تہذیب چھیہ قافیہ بندی تہ وزنکے نتیجہ۔ اگر یہ پوز مانو زِ امہِ شعرہ نش چھہ غالبن مراد قافیہ تہ وزن، غالبن آسہِ ہے نہ تیلہ پانہ قافیہ بند تہ وزنہ پابند شاعری کرمژ، یعنی پننۍ تمام شاعری عروض چہ لیہ تہ نیہ پابند کٔرمژ۔ سہ گوژھ تیلہ وزنہ روس کریکہ ناد تُلن۔ راہی ین تہِ چھیہ پانہ پننۍ سٲرے غزلیہ شاعری تہ نظمن ہند اکھ حصہ اوترہ تام  قافیہ تہ وزنچ پابند کرمژ ۔ یعنی اگر پزۍ پاٹھۍ قافیہ تہ وزن ضروری ٲسۍ نہ تسندین غزلن منز کیازِ چھیہ یمن ہنز مکمل پابندی؟ راہی کیازِ کنۍ کتھ، ونہ وُن، خۅدایا بیترِ نظمہ راتھ تام ونان یمن منز وزنچ تہ قافیچ پابندی تس کرنۍ پیوان چھیہ۔ یہ سبق کیا تہ کس کیت؟ اگر کانہہ شخص زیوِ کُنہِ پزرچ حمایت تہ پرچار کرِ تہ عملا باہوش و حواس پزر پانہ نظر انداز کرِ، یعنی لوکن ونہِ قافیہ تہ وزن مہ ورتٲوو تکیازِ یم چھہِ نہ شاعری ہنزِ مولہ ماہیژ منز شامل مگر بییہ اندہ روزِ پننین غزلن تہ نظمن منز دۅشونی ہند ورتاو کران، تس شخژس کیا ونو؟

راہی یمہِ ساتہ تہِ پابند یا فارمل شاعری ہنز کتھ کران چھہ مثلا پیٹھم لکہ بٲتھ سہ چھہ اکثر قافیہ تہ وزنچ پاسداری کرن والین ملامت کران۔ کیازِ؟

 

قافیچ ٲڈرن

راہی چھہ اتھ بٲتس تشریح کٔرتھ ہاوان زِ اتھ بٲتس منز کٲژا تخلیقیت چھیہ۔ مگر تشریح علاوہ ٲس تتھ چیزس تہِ سننچ ضرورت یتھ امہِ بٲتہ کس ہیتس سیتۍ تعلق چھہ یعنی قافیہ بندی۔ افسوس چھہ زِ راہی چھہ بٲتس پیٹھ نظر تراونہ ورٲے (خیالی) ترنگرِ والین پیٹھ پننۍ ژکھ کڈان۔ امیک وجہ چھہ یہ تہِ زِ سہ چھہ معنی یسے منز بند گومت بٲتہ کین لفظن چھہ نہ سنیومت۔ قافیہ چہ کارسازی ورٲے کتھہ پاٹھۍ ہیکہ کانہہ نقاد یا پرن وول اتھ بٲتس لطف تُلتھ؟ یہ کتھ گژھہِ یاد تھاونۍ زِ لکہ شاعری منز چھیہ قافیہ بندی سیٹھا اہمیت۔ تہۍ وچھو زِ یتھ بٲتس منز تہِ چھہ قافیہ نہ صرف اندن پیٹھ بلکہ جایہ جایہ میلان۔ یمن لکہ بٲتن منز چھہ آہنگ، روانی تہ یاد تھاونچ قابلیت قافیہ بندی ہندی بدولت۔ اگر یمن لکہ بٲتن منز قافیہ تہ وزن ورتاونہ آسہ ہن نہ آمتۍ یم آسہ ہنے نہ سٲنس یاداشتس منز محفوظ رودۍ متۍ تہ  اسہِ تام واتۍ متۍ۔ لکہ شاعری ہنز ٲڈرنہِ منز چھہِ یم زہ چیز سرس۔  وچھو اتھ بٲتس منز کتھہ پاٹھۍ چھیہ قافین ہنز طومار۔ 27 ہن لفظن ہندس اتھ بٲتس منز 15 قافیہ آسنۍچھہ نہ اتفاق (یا ترنگرِ والین ہنز کاکۍگی) بلکہ تتھ شعریاتس کن اشارہ یمچ کارفرمایی اتھ شاعری منز چھیہ۔ یونانۍ شعریات ہیکہِ نہ سانین لکہ بٲتن پیٹھ چسپان سپدتھ۔  ترٲوو قافین پیٹھ نظر:

قافیہ 1:   رینزس/شیشس/پھِرس
قافیہ 2:   گیندم/ اونم/ لویم/ رُم/ دپیم
قافیہ 3:   راے/ ہاے/ چاے
قافیہ 4:   پانے/ہتے/ ہے/ ژھۅپے

یمو قافیو علاوہ چھہ اتھ بٲتس منزکینژن لفظن ہند تکرار تہِ موجود۔
رینزس /رینزس
 گیندم/گیندم
 ببن/بب
شیشہ/شیشس
 ژھۅپہ/ژھۅپے

مزید چھہ بٲتس منز آوازن ہند ہشر تہ تکرار تہِ قابل غور۔ گۅڈنکین دۅن مصرعن منز نون تہ کھنکھۍنون شییہ (6) لٹہِ تہ پتمین دۅن مصرعن منز /پ/آواز ژورِ (4) لٹہِ۔ یمو دۅیو آوازو علاوہ چھیہ/ر/ آواز تہِ بٲتس منز ستہِ (7) لٹہِ آمژ۔ یمن آوازن ہندِ تکرارہ سیتۍ چھہ بٲتہ کس آہنگس تہ روانی منز اضافہ گومت۔ یم دۅشوے عنصر لکہ بٲتن ہندِ خاطرہ اہم چھہِ۔ اسۍ ہیکو نہ تتھ شاعری منز وزن تہ قافیہ نظرانداز کٔرتھ یۅس تمہِ شعریات موجوب وننہ آسہِ آمژ یتھ منز یم لازم چھہِ۔ اتھ شاعری اگر یمن عنصرن ہندِ مۅکھہ گزگتی تہِ لگاونہ ییہ ناجایز چھہ نہ کینہہ۔

یتھ مضمونس منز اوس یتے ہاون زِ وزن تہ قافیہ چھہ پیٹھمہ لکہ بٲتہ چہ ٲڈرنہِ منز شامل تہ یمو ورٲے امہ بٲتک تصور کرُن بلکہ امچ تحسین کرنۍ تہِ ناممکن چھیہ۔ 

وۅپر کیا تہ پنن کیا

 "اکھتے ما ین پتمس ہتس ڈۅڈس ہتس ؤریس منز کاشرس شعرہ
نطقس اگادِ گمژہ واریاہ زبجورِ تہِ مژراونہ۔” 
 –محمد یوسف ٹینگ

"تام رٹہِ تمن عروضہ پاسدارن پتھ یم کاشرِ شاعری زیر کروُن وۅپر
عروضی گہنہ لاگن چھہِ یژھان۔”
–شفیع شوق

 

نیب کس  شمارہ 24 ہس منز وون میہ زِ وزن چھہ شعری ہیژ ہند اکھ حصہ یمہِ کنۍ یہ مثلا غزلہ کہ خاطرہ ضروری بنان چھہ۔ مگر آزاد نظم یا نثری نظمہِ ہندِ تعلقہ یۅس روایتی ہیت مسمار کرنہ خاطرہ وجودس منز آیہ چھہ نہ وزن ضروری حالانکہ اگر ورتاونہ تہِ آو غیر مستحسن تہِ چھہ نہ۔ گویا شاعر ورتاویا وزن کنہ نہ، تمیک دارہ مدارہ چھہ شاعرس پیٹھ۔ شاعر کُس وزنہ نظام ورتاوِ تہ کُس نظام چھہ کُنہِ زبانۍ ہندِ خاطرہ مناسب تہ موافق تہ موزون تہ لگہار، تمیک دارہ مدارہ تہِ چھہ شاعرسے پیٹھ۔ اگر لل دیدِ تہ شیخ العالمن کانہہ خاص نظام ورتوو، تمن باسیوو سے مناسب، موافق تہ لگہار تہ شاید اوسکھ تی برونہہ کنہِ، تہ اگر محمود گامی تہ رسول میرن کانہہ بیاکھ وزنہ نظام تہِ ورتوو تمن باسیوو سہ نظام تہِ موافق تہ لگہار۔

poet

لل دیدِ تہ شیخ العالمن کوتاہ انصاف کور تتھ وزنہ نظامس سیتۍ یُس تمو پننہِ شاعری منز ورتوو، تہِ زاننہ خاطرہ چھہ گۅڈہ سہ نظام سمجن ضروری۔ تمہِ نظامک چھہ نہ ثیقہ پاٹھۍ کٲنسہِ علم، لہذا چھہ اسہِ باسان زِ تہنزِ شاعری ہنز موزونیت چھیہ بے داغ۔ البتہ چھہِ اسۍ تمہِ وزنہ نظام چہ (یعنی فارسی عروض چہ) زانۍ کنۍ محمود گامی تہ رسول میر سندس ورتاوس کٹھہ کڈان یُس تمو پننہ شاعری ہندس اکس اہم حصس منز ورتوو۔ حقیقت چھیہ یہ زِ یم دۅشوے وزنہ نظام چھہِ کَنہ کہ لحاظہ کاشرِکہ خاطرہ ہوی موزون باسان۔ یہ چھہ بیاکھ سوال زِ یمن وزنہ نظامن ہند کُس کُس وزن (یا لے) چھہ کاشرس براہ۔ ممکن چھہ کانہہ وزن(لے) ما ہیکہِ نہ آسان، موافق تہ لگہار ٲستھ، یا موضوع، مقصد تہ لہجہ کہ لحاظہ ما ہیکہِ اکھ وزن (لے) زیادہ مناسب تہ لگہار ٲستھ۔ مثلا یوت تام لل دیدِ تہ شیخ العالم سندِ وزنہ نظامک تعلق چھہ، تمو چھہ تمام شاعری منز صرف اکوے آہنگ ورتوومت یس زن واریاہ حدس تام محدود تہ یک سطحی چھہ۔ شاید اوس یہنزِ شاعری ہنزِ نوعیژ کنۍ یی مناسب۔ لہذا چھہ نہ یہنزِ شاعری منز آہنگک سہ تنوع یُس حبہ خوتونہِ، صوفی شاعرن یا محمود گامی تہ رسول میر سنزِ شاعری منز میلان چھہ۔

اسۍ چھہِ نہ یہ تہِ ؤنتھ ہیکان زِ لل دیدِ تہ شیخ العالم سند وزنہ نظام تہ حبہ خوتونہ ہند وزنہ نظام چھا اکوے کِنہ الگ الگ۔ اکوے وزنہ نظام یُس اسۍ آسانی سان پہچٲنتھ ہیکان چھہِ سہ گوو فارسی وزنہ نظام ۔ امہ الگ یہ کینژھا چھہ تتھ چھہِ اسۍ کُنہِ حجتہ ورٲے پانے کاشر وزنہ نظام ونان۔ اگر اسۍ تجزیاتی نظرِ اتھ وزنہ نظامس وون دمو اسۍ وچھو زِ فارسی وزنہ نظامہ برونہہ چھہ سانہِ تمام تر شاعری منز ہیجلۍ نظام ورتاونہ آمت۔ اتھ ونوا اسۍ کاشر وزنہ نظام کِنہ بیاکھ اکھ وزنہ نظام یُس دنیا چین باقی زبانن منز تہِ رایج چھہ تہ کاشرِ زبانۍ تہ براہ اوس؟  

اسۍ چھہِ یژھے حجتہ زبانۍ متعلق تہِ قایم کران۔ اگر پرون چھہ، سہ گوو پنن تہ اگر نوو چھہ سہ گوو وۅپر۔ سنسکرتی کاشر (مثلا لل دیدِ ہندۍ واکھ) گوو  پنن کاشر تہ فارسی آمیز کاشر (مثلا رسول میرنۍ غزل) گوو وۅپر۔  یتھے پاٹھۍ چھہ ازکل اسۍ  تتھ زبانۍ کاشرچ آلودہ شکل تصور کران یۅس اردو آمیز چھیہ۔

سۅے چھیہ زندہ زبان تہ زندہ ادبی روایت یتھ منز  اثرات پانس منز جذب کرنچ صلاحیت آسہِ۔ یہ تبدیلی چھیہ نہ کانسہِ نفرہ یا جمٲژ ہندِ طرفہ کنہِ منصوبس تحت سپدان بلکہ چھیہ یہ اجتماعی سطحس پیٹھ وارہ وارہ شکل رٹان۔

من ندانم فاعلاتن فاعلات

عروض چھہ آہنگ چہ ضابطہ بندی ہند ناو۔ یہ ضابطہ بندی چھیہ پریتھ عروضس منز، خاص کر منظم عروضن منز یمن منز عربی فارسی عروض شامل چھہ۔ یہ چھہ پوز زِ نمونہ وزن (مثلا مفاعلن فعلاتن مفاعلن فعلن) چھہِ مشینی مگر زبانۍ ہندۍ یم متحرک تہ زندہ لفظ یمن نمونن پیٹھ گنڈنہ یوان چھہِ، تم چھہِ امہِ بنیادی آہنگ علاوہ پنن تہِ اکھ زندہ لسانی آہنگ تھاوان یتھ منز لہجہ تہ معنیک تہِ برابر دخل آسان چھہ۔ مطلب یہ زِ مفاعلن فعلاتن مفاعلن فعلن وزن اگرچہ مشینی چھہ اتھ پیٹھ وننہ آمتۍ غزل گژھن نہ مشینی آسنۍ تکیازِ میکانیکی آہنگ کنے ٲستھ تہِ گژھن نہ تم اکی لسانی تہ معنوی آہنگکۍ آسنۍ۔ اگر یُتھ صورت حال برونہہ کن ییہِ سۅ چھیہ لازما شاعر سنز کمزوری، یۅس خاص کر تکرار یا تقلیدک نتیجہ آسان چھہ۔ مثلا اتھ وزنس پیٹھ وننہ آمتۍ کاملنۍ غزل گژھن باقی شاعرن ہندین غزلن نش تہنزِ مخصوص زبانۍ کنۍ اکۍ سے عروضی نمونس پیٹھ ٲستھ تہِ لسانی آہنگ کہ لحاظہ مختلف آسنۍ۔ مثالی وچھن ترایہ کنۍ گژھن اتھ وزنس پیٹھ کاملنۍ ونۍ متۍ غزل تہِ اکھ اکس نش مختلف لسانی آہنگ ہیتھ آسنۍ۔ یہ نکتہ کرون بنمیو ترییو غزلو سیتۍ واضح ۔ اکھ غزل چھہ امین کاملن تہ بیاکھ رفیق رازن تہ بیاکھ شفیع شوقن۔ 

سہ وق سہ رٲژ پہر ییلۍ جگر وہاں آسی
بدن یہ ماز چھنتھ کرنز ہیو مۅژاں آسی
یہ لر تہ کانہِ لگاں کیل ہۅ لر تہ اڈۍ جہ فنا
تہِ پوشہ پان پنن بسترس سناں آسی
(امین کامل)

یِتھے چھہِ باگہ یواں کس مژر تہ خاموشی
سراں چھہ زندہ زوے کُس قبر تہ خاموشی
ژۅپارۍ زنتہ یہ چونے نظارہ بییہ نہ کہنی
ژۅپارۍ زنتہ یہ میانی نظر تہ خاموشی
(رفیق راز)

گژھن تہ اوس تمس گوو گژھتھ سہ آو نہ زانہہ
سیٹھا زمانہ گژھتھ آوہ آو دراو نہ زانہہ
لبن زٔلس چھہ ژشاں مول اندرہ باچھہِ کلا
ہنیوو گٹہِ منزے وۅگہ ووبۍ پھبیاو نہ زانہہ
(شفیع شوق)

یمن ترین غزلن ہند لسانی آہنگ چھہ نہ اکۍ سے مشینی وزنس پیٹھ ٲستھ تہِ کنے۔ یمن غزلن ہند انفرادی لسانی آہنگ بناونس منز ییتہِ یہندس مخصوص لفظیاتس، لفظن تہ تمن ہنزن آوازن ہندس دروبستس تہ مخصوص لہجس دخل چھہ تتہِ چھہ کنہِ حدس تام اتھ منز ردیف قافیہ تہِ مدد گار سپدان۔ امہِ علاوہ وچھو شوق سندین شعرن منز واقعاتی فعلن ہند ورتاو تہ اتھ مقابلہ رفیق راز نین شعرن منز واقعاتی فعلن نش احتراز، تہ کامل سندین شعرن منز شرطیہ فعل۔ یم سٲری لسانی پہلو چھہِ شعرک مخصوص آہنگ تعمیر کرنس منز مدد کران۔ وۅنۍ وچھون کاملنے بیاکھ غزل یس اتھۍ مفاعلن فعلاتن مفاعلن فعلن کس وزنس پیٹھ وننہ چھہ آمت:

یہ نار کیتھ چھہ الہی شہر شہر چھہ دزاں
عقل گمژ چھیہ دہے دہ اگر مگر چھہ دزاں
دزاں چھہِ بام پیواں ژینۍ ہیواں الاو کٹھین
گرس گرس چھیہ پلاں ژھٹھ نفر نفر چھہ دزاں

امہِ غزلک لسانی آہنگ چھہ یک دم کاملنہِ پتمہِ غزلہ نش مختلف تہ یتھے پاٹھۍ راز تہ شوق نہِ غزلہ نش تہِ۔ نکتہ چھہ یہ زِ وزنچ مشینی نوعیت (یۅس پریتھ قسمہ کہ عروضچ بنیاد چھیہ) چھیہ نہ یتھین غزلن برونہہ کنہِ کانہہ معنی تھاوان۔ یتھین غزلن منز چھہِ مشینی وزنہ بجایہ یمن غزلن ہنز لفظیات، آوازن ہنز دروبست، معنیاتی فضا تہ لہجک آہنگ پرن والۍ سندس ذہنس آوراوان۔ مگر ییلہِ کانہہ شاعر یتھین غزلن ہنز محض تقلید کرنہِ بیہان چھہ، عروض کہ مشینی نوعیتک احساس پیدہ گژھن چھہ لازمی۔ یہ احساس چھہ تیلہِ تہِ سپدان ییلہِ اسۍ رسالن منز اکی لسانی آہنگکۍ تہ لہجکۍ غزل صفحہ پتہ صفحہ وچھان چھہِ۔ یہ احساس چھہ نہ عربی فارسی عروض سے سیتۍ مخصوص بلکہ ہیکہِ یہ کنہِ تہِ عروضس منز ممکن ٲستھ۔ اتھ چھہ نہ صرف عروض کس ورتاوس سیتۍ رشتہ بلکہ لفظیاتس تہ لہجس سیتۍ تہِ۔ مثالہِ پاٹھۍ نمون اسۍ کاملن بنم غزل یس فاعلاتن مفاعلن فعلن کس وزنس پیٹھ چھہ:

نندرِ اندر نندر خراب تہِ کر
با سکوں روز اضطراب تہِ کر
سونچہ سودرکۍ ملر تلکھ ہمراہ
شیچھ یہ باوی دلک حباب تہِ کر 

اتھۍ غزلس پیٹھ ییلہِ راہی ہیو شاعر پنن غزل نہ صرف وزنہ کنۍ تہ قافیہ کنۍ بلکہ لہجہ کنۍ تہِ تقلید کٔرتھ ونان چھہ، یک دم چھہ تکرارک احساس گژھان۔ اگر اتھ آہنگس ساری شاعر یتھے پاٹھۍ پتہ لگن یۅہے احساس گژھہِ عروض کس مشینی احساسس منز تبدیل۔ وچھوکھ راہینۍ شعر:

سودرہ تارس تراں سراب تہِ سر
ٹورۍ اسناہ کراں گلاب تہِ ہر
چانہِ جسمچ سبز سپار پٔرم
میانہِ روحک کرہن عذاب تہِ زر 

نہ صرف چھہ اتھ منز کاملنہِ غزلہ کہ بنیادی لہجک آہنگ برقرار تھاونہ آمت بلکہ چھہ قافیہ تہِ برقرار تھاونہ آمت۔ اتھ غزلس منز چھہ کاملنہِ بییہِ اکہ غزلک ول تہِ ورتاونہ آمت۔ یعنی دوگن قافیہ۔ وچھون سہ غزل تہِ۔

چشمے تلکھ اضطراب ہاوکھ
دم دتھ تہِ کوتاہ حباب تھاوکھ
ماگس اندر تے امار برادی
ژٹۍ ژٹۍ حریرس گلاب چھاوکھ 

میانہِ پیٹھمہِ بحثک مطلب چھہ یہ زِ جان شاعر سندس اتھس منز چھہ نہ عروضک مشینی پاس نظری یوان۔ سہ چھہ پننہِ لہجہ تہ لفظیات چہ انفرادیژ تہ تحرک سیتۍ عروضک سہ پاسے نظرن دور کران۔ کامل، راز تہ شوق سندین غزلن منز چھہ نہ وزنہ کس مشینی نمونس منز کانہہ انحراف کرنہ آمت۔ تمہِ وارے چھہ یمن تریشونی غزلن منز آہنگک تنوع میلان۔ شاعری ہندِ آہنگک تنوع ہیکہِ لسانی انفرادیژ تہ لسانی تنوع علاوہ زحافن ہندِ ذریعہ یا عروضی انحرافو سیتۍ تہِ پیدہ کرنہ یتھ۔ عربی فارسی عروضس منز چھہِ آہنگ زیٹھین ژھۅٹین ہیجلین ہنزِ اکہ خاص ترتیبہِ سیتۍ پیدہ کرنہ یا گنڈنہ یوان۔ لہذا یمن ہنز یہ ترتیب قایم تھاونۍ چھیہ امہِ عروضچ اولین ضرورت۔ تمن عروضن منز ییتہِ عروضچ (آہنگ پیدہ کرنچ) بنیاد ژھۅٹین زیٹھین ہیجلین ہندس ترتیبس پیٹھ چھیہ نہ، تمن منز اگر ہیجلۍ اورہ یور تہِ گژھن کانہہ فرق پییہ نہ۔ مگر یتھ عروضس منز زیٹھین ژھۅٹین ہیجلین ہنز خاص ترتیب ورتاونہ یوان آسہِ، سۅ برقرار تھاونۍ چھیہ ضروری۔ البتہ اکہِ خاص ترتیبہِ سیتۍ پیدہ کرنہ آمت آہنگ برقرار تھٲوتھ رکھہِ ڈلنس چھہِ زحافہ ورتاو ونان۔ یعنی کینژن جاین چھہ تنوع پیدہ کرنہ کہ غرضہ ترتیبہ منز تبدیلی کرنک اجازت۔ پریتھ کانہہ شاعر چھہ نہ آہنگن ہند یوت ماہر آسان زِ سہ کرِ نوۍ نوۍ زحافہ ایجاد۔ اوے چھہِ پریتھ بحرس تہ وزنس عروضی کتابن منز کینژن مخصوص زحافن ہنز نشاندہی وتھ ہاونہ خاطرہ کرنہ آمژ تاکہ مجبوریو، مقصدو علاوہ ییہِ مختلف زبانن ہندِ آہنگک تہِ خیال تھاونہ۔ زحافہ ورتاوہ سیتۍ چھہِ نہ صرف اکہ وزنہ پیٹھہ نوۍ وزن بناونہ یوان بلکہ چھہ اکۍ سے وزنس منز آہنگک تنوع تہِ پیدہ کرنہ یوان۔ امہِ قسمک زحافہ ورتاو چھہِ نہ سانۍ شاعر عروض نہ زاننہ کنۍ کٔرتھ ہیکان۔ یمن زحافہ تبدیلین ہند اجازت چھہ زیادہ تر عروض تہ ضربس تام محدود تاکہ وزنک کلہم آہنگ روزِ برقرار۔ مگر کینژن وزنن منز ہیکہِ امہ قسمچ تبدیلی باقی ارکانن منز تہِ سپدتھ تہ آہنگس پییہ نہ تنوع علاوہ کانہہ فرق۔ مثلا کاملن یہ شعر:

ڈیر چھی سخنن گمتۍ نیر تہ بیہہ آبس منز
فاعلاتن فاعلاتن فعلاتن فعلن
معنہ حرفن چھہ ہراں تیزاں چھیہ تیہہ آبس منز
فاعلاتن فعلاتن فاعلاتن فعلن

وچھو اتھ منز کتھہ پاٹھۍ چھہِ فاعلاتن تہ فعلاتن (بہ تحریک عین) آزادی سان اکھ اکہ سیتۍ بدلاونہ آمتۍ۔ امہ تبدیلی سیتۍ یودوے دۅن مصرعن ہندس آہنگس منز تنوع پیدہ گومت چھہ مگر کنہِ قسمک اختلاف یا بد آہنگی چھیہ نہ پیدہ گمژ۔ ضرورت چھیہ یہ زِ نہ صرف ین جایز زحافہ کھلہ پاٹھۍ ورتاونہ بلکہ گژھن تتھۍ انحراف تہِ کرنہ ینۍ یمن ہند اجازت روایتی عروضی اصول چھہ نہ دوان مگر یم یا تہ زبانۍ ہندِ مخصوص آہنگہ کنۍ یا کنہِ معنوی مجبوری تہ تنوع کہ غرضہ کنۍ مستحسن آسن۔ یژھہ تبدیلی کرنہ خاطرہ چھیہ دۅشونی عروضس تہ زبانۍ ہندس آہنگس پیٹھ نظر آسنۍ ضروری۔ شاید چھہ یتھنے انحرافن مدنظر "کاشر شاعری تہ وزنک صورت حال” مقالک مصنف ونان:

’’عربی فارسی عروضہ کس محض مشینی ظاہرس آویزہ روزنس چھہ نتیجہ نیران زِ اسۍ چھہِ بعضے رتین کیو بڈین شاعرن ہندۍ کینہہ شعر وچھتھ پریشان ہوۍ گژھان زِ تمن کُس تُل کرو یا میژ ہیمو؟‘‘ (ص ۵۳)

امہِ اقتباسہ پتے چھہ سہ کینژن شعرن ہنزہ مثالہ دوان یمن منز رسول میرن یہ شعر تہِ چھہ۔

شہمارۍ زلفو نال وولہم رود افسانے
وۅنۍ ونتہ کم افسانہ پرے بال مرایو

اگر یہ مفعول مفاعیل مفاعیل فعولن وزنس پیٹھ نمون، یہ چھہ نہ مشینی طور پورہ وتران بلکہ چھہ کینژن جاین پھٹان۔ مگر اتھ منز چھیہ نہ پھٹنہ باوجود کانہہ بد آہنگی محسوس سپدان۔ یمیک وجہ اکھ الگ بحث چھہ تہ ییتہِ نس ونو اسۍ زِ یہ شعر چھہ یتھ کتھہِ کن خوب اشارہ کران زِ رکھہِ ڈلن یا زحافہ ورتاون یا ایجاد کرن کتھہ پاٹھۍ ہیکہِ آہنگ کہ لحاظہ مستحسن ٲستھ۔ شعر پھٹنہ باوجود چھہ نہ آہنگ مجروح گژھان۔ کانہہ لفظ ہیکہِ نہ اورہ یور ڈلتھ۔ کانہہ تصحیح چھیہ نہ ممکن۔ یہ شعر چھہ لفظن ہنزِ چستی تہ بندشہِ ہنز بہترین مثال پیش کران۔ اتھ برعکس نیون راہی ین یہ شعر:

نہ ابتدا نہ پریتھنپا نہ انتہا باسی
وزکھ اگر ٹھینوہ روس زانہہ میہ ونۍ زِ کیا باسی

یمن دۅشونی مصرعن منز چھہ نہ وزنس منز کانہہ انحراف کرنہ آمت تہ نہ چھہ کانہہ زحافہ ورتاونہ آمت۔ مگر وزنہ کنۍ دۅشوے مصرعہ مشینی طور برابر ٲستھ تہِ ہیکون نہ گۅڈنیک مصرعہ دویمس مصرعس ہم آہنگ مٲنتھ۔ بلکہ چھہ دویم مصرعہ کنہِ حدس تام بد آہنگ، تکیازِ اتھ منز چھیہ گۅڈنکس مصرعس مقابلہ لفظن ہنز بھرمار۔ دویم وجہ یہ زِ گۅڈنکہِ مصرعک آہنگ قایم تھاونہ خاطرہ چھہ دویم مصرعہ سیٹھا وُژھہِ تہ تیز رفتاری سان پرُن پیوان ییلہ زن شعر امہِ جلدی ہند کانہہ معنوی مطالبہ چھہ نہ کران بلکہ چھہ یہ مصرعہ کنہِ تھکہ وراے پشہ پیٹھہ شین والنس یا بیگارۍ نکھہ والنس برابر۔ راہی نہِ امی غزلک بیاکھ شعر تہِ وچھون:

بہ چھس نہ ونہِ تہِ سۅ کنۍ شیچھ تسنز ہیکاں مۅلوتھ
ژہ کیا کرکھ اگر ابلیس خیر خواہ باسی

اتھ شعرس منز تہِ چھہ گۅڈنیک مصرعہ مشینی طور وزنس برابر ٲستھ دویمہِ مصرعہ کہ آہنگہ نش زیٹھان۔ یم مصرعہ تہِ چھہِ نہ مکمل طور ہم آہنگ۔ راہینۍ یم شعر چھہِ وزن مشینی طور ورتاونک بیاکھ پہلو پیش کران۔ یعنی شعرک لسانی آہنگ اوک طرف ترٲوتھ، وزنہ برابری کرنۍ۔ یمہِ قسمچ خالص وزنہ برابری یمن شعرن منز میلان چھیہ سۅ چھیہ نہ لسانی آہنگک رت نمونہ پیش کران۔ ممکن چھہ یہ آسہِ راہی سنز شعوری کوشش مگر یہ ہیکہِ اظہارس یعنی لفظ وبیانس پیٹھ دسترس نہ آسنک نتیجہ تہِ ٲستھ۔ یوت تام نہ شاعرس یہ دسترس حاصل سپدِ توت تام چھہ سہ عروض کہ جبرکۍ بداد دوان۔ یمہِ ساتہ مولانا رومی ونان چھہ : شعر می گویم بہ از قند و نبات/من ندانم فاعلاتن فاعلات سہ چھہ اتھۍ مشینی مزازس کن اشارہ کران۔ مولانا چھہ نہ عروضکۍ بداد دوان یا امہِ کہ جبرچ کتھ کران بلکہ چھہ سہ یہ ونان زِ بہ چھس قندہ تہ نباتکۍ پاٹھۍ میٹھۍ شعر ونان یعنی پر آہنگ شعر۔ سہ چھہ نہ یم میٹھۍ شعر عروض نیبر نیرتھ یا عروض کین اصولن تجاوز کٔرتھ ونان بلکہ چھہ مولاناہن عربی فارسی عروض پریتھ پابندی سان ورتومت۔ پابندی سانے اوت نہ بلکہ جایز زحافہ ورتٲوتھ تنوع سان تہِ۔ تسند مقصد چھہ یہ زِ سہ چھہ نہ فاعلاتن فاعلاتنچ مشینی ضابطہ بندی یا وزنہ برابری نظرِ تل تھٲوتھ شعر ونان۔ یعنی سہ چھہ نہ زبردستی کٔرتھ لفظن منز وزنہ برابری کران۔ اگر تہِ کرنہ ییہِ تیلہ گژھن بد آہنگ شعر موزون یمن ہنز مثال اسہِ راہی سندین پیٹھمین شعرن منز وچھ۔ "من ندانم” گوو نہ "بہ زانہ نہ”۔ سہ گوو لفظی معنی، مگر یہ چھہ شعر۔ مولانا اوس وارہ کارہ عروض زانان تہ ورتاوان۔ امیک مطلب گوو سہ چھہ لفظن ہندس میچھرس یعنی لسانی آہنگس اہمیت دوان، فاعلاتن فاعلات کس ژھرس مشینی گردانس نہ۔ راہینۍ شعر اگر وزنہ کس مشینی گردانس پیٹھ پورہ وتران چھہِ، تاہم چھہِ نہ تم زبانۍ تہ آہنگک میچھر پیدہ کٔرتھ ہیکان یمچ کتھ مولانا پیٹھمس شعرس منز کران چھہ۔

عروض، ایجاد تہ الہام

alkhalil
أبو عبد الرحمن الخليل بن أحمد الفراهيدي
718-786

"(پرانین) تواریخ (نویسن) تہ علم لغات (کین عالمن) چھہ بہت اوسمت زِ خلیلس برونہہ چھیہ نا کٲنسی عدبی شاعری ہندس وزنس متعلق کُنہِ قسمہ کین قاعدن ہنز کانہہ زان ٲسمژ تہ نہ چھہ خلیلس برونٹھہ کنہِ امہ نوعیژ ہند بییہ کُنہِ زبانۍ ہند کانہہ رہنما نمونہ اوسمت، تہ توے کنۍ چھہ تسندِ دسۍ عروض اختراع سپدنک واقعہ یہ دپۍ زِ تہِ الہامک نتیجہ گنزرنہ آمت” رحمن راہی، کاشرِ شاعری تہ وزنک صورت حال (ص 13)

خلیلن کتھہ پاٹھۍ کور علم عروض "ایجاد”؟ تتھ متعلق چھیہ واریاہ کہانی۔ مثلا اکھ یہ زِ اکہ ساتہ ییلہ خلیل بصرہ شہرچ کوچہ گردی کران اوس ،امس گوو اتہِ ٹھانٹھرۍ ٹاسن ہند آہنگ کنن تہ یکدم پیوو امۍ سندس ذہنس منز عربی شاعری ہندِ آہنگک اصول تھنہ۔ دپان خلیل گوو فورا گرہ تہ ریتس کھنڈس ژاو چلس، تورہ ییلہ واپس دراو، عروضک نظریہ اوس مکمل سپدمت۔ تمۍ ٲس تمام عربی شاعری ہنز تقطیع کرتھ امکۍ تمام آہنگ بدِ کڈۍ متۍ۔ یہ یا خلیل نس اتھ "ایجادس” سیتۍ منسوب یژھہ باقی کہانی چھیہ صرف داستانہ مگر یمن منز چھہِ سیٹھا اہم تہ دلچسپ نکتہ تہِ پوشیدہ۔ مثلا یہ اہم کتھ زِ خلیلن عروضی نظریہ چھہ تجرباتی فکرِ تہ تکنیکہِ ہند نتیجہ۔ نیوٹن تہ تسندِ ژونٹچ داستان تہِ چھیہ یتھے نکتہ پیش کران۔ امی لحاظہ چھہ اتھ علمس اختراع وننہ آمت۔

خلیل نہِ امہ کہانی ہندۍ الگ الگ روپ چھہِ ابن خلقان سنزِ وفیات الاعیان (جلد2 ص 242)، یاقوت الحمادی سنز معجم الادباء(جلد 4 ص182)، ابن المعتز سنزِ طبقات الشعرا ء (ص96-95)۔ المرزبانی سنز نورالقبس (ص85)، تہ ابن الانباری سنزِ نزہۃ الالباء (ص 47-46)  کتابن منز درج۔ پیتھاگورسس متعلق تہِ چھیہ ٹھانٹھرۍ کہانی مشہور زِ ٹھانٹھرۍ ٹاس بوزتھ کور تمۍ موسیقی ہندین وقفن ہند نظریہ تخلیق۔ (وچھو B. Farrington سنز کتاب Greek Science, Its Meaning for Us, 1961, p.50)۔

یہ کہانی خلیل نس عروضس پیٹھ تہِ لاگو کرنہ سیتۍ چھیہ یتھ نکتس تایید سپدان زِ امہ عروضچ ابتدا ٲس پیتھاگورس سندِ نظریکۍ پاٹھۍ تجرباتی ۔ سنسکرت عروض کس ایجادس متعلق تہِ چھیہ یتھے پاٹھۍ واریاہ کہانی موجود۔ اکیک ذکر چھہ بیرونی تہِ کران۔

پرٲنس دنیاہس منز اوس سارۍ سے علمس الہام وننہ یوان۔ شاعری تہِ ٲس الہامے ماننہ یوان۔ اتھ اعتقادس پتہ کنہِ اوس یہ مذہبی خیال زِ انسان سند سورے علم چھہ خدایہ سندِ طرفہ تسنزن ضرورتن مدنظر رژھ رژھ ودیعت سپدان۔ انسانہ سند علم چھہ امہِ نظریہ کنۍ وحی الاہی یک نتیجہ۔ اگر الہام ازۍ کس محدود معنیس منز نمون نہ، تیلہِ چھیہ نہ یہ کانہہ اسنۍ لایق یا تعجب کھینۍ لایق کتھ اگر عالمو خلیل سندس عروضس الہام وونمت اوس۔