کاشر رسالہ واد (قسط 5) : قاضی غلام محمد

qazi

وادس منز چھپن والین غزلن منز آسہ تمہ وقتہ چہ کینہہ نوِ تہ توانا آوازہ یمو منزہ قاضی غلام محمد، رفیق راز، م ح ظفر تہ شفیع شوق سند ذکر خاص طور ضروری چھہ۔

قاضی غلام محمد سندۍ چھپییہ کل شیہ غزل – زہ شمارہ 1، زہ شمارہ 4 تہ اکھ اکھ شمارہ 6 تہ 8 منز۔ قاضی سند غزل سپد امہ چہ متاثر کن تازگی کنۍ سیٹھا مقبول، مگر کم گو آسنہ کنۍ ہیوک نہ یہ غزل پورہ پاٹھۍ شعری منظرنامس منز کاڈ کڈتھ۔

قاضی سندِ غزلچ تازگی چھیہ امہ کین شعرن ہنزِ طلسمی حیرت انگیزی علاوہ ویدۍ تہ عام مضمون ژیتس منز درن واجنین دلکش/غیر معمولی بصری صرژن ہندِ ورتاوہ کنۍ۔ امۍ سندۍ غزل چھہِ عصری حقیقت نش دور (شاید فرار کٔرتھ) پننس پانس منز اکھ طلسمی، حیرت آمیز (سہ حیرت یتھ منز خوفہ بدلہ احترام تہ کرامٲژ ہند جذبہ آسہِ)، خوبصورت تہ وفا شعار دنیا آباد کران۔ شاعر چھہ تخیل کہ قوتہ سیتۍ امکاناتن ہنزہ تژھہ صورژہ تخلیق کران یم ظاہری دنیاہس سیتۍ مماثلت تھٲوتھ تہِ تمہ نیبر باسان چھیہ۔ دویمین لفظن منز ونو ز قاضی سندین شعرن ہنز سیٹنگ چھیہ حقیقی منظرن بجایہ خوابن ہنزہ صورژہ باسان۔

بنمین شعرہ مثالن منز چھہ گۅڈنیک شعر قاضی سنزِ شاعری ہنز کونز۔

بقول شہناز رشید قاضی سنز شعرہ سۅمبرن چھیہ "صورت خانہ” ناوہ چھپیمژ یتھ منز الہ پلہ غزل 25 مرہ چھہِ۔

اچھ وٹتھ بیہہ یہ اوند تہ پوکھ مشراو
صورژن ہند نگار خانہ سجاو
میون دل رنگہ موت چھہ معصوم شُر
چانۍ یاداوری چھیہ سبز الاو
خاصہ جامن کزلۍ ونن تس گٔے
تاپھ کیا کرنہِ میون کُٹھ ژایاو

تتھہ پاٹھۍ ژہ پیہم راتھ ژیتس
زن کاوہ قمیر ژول بونیو تلۍ
پوت ژھایہ کزلۍ اچھ ٲنہ بدن
تمہ بازرہ ہیمہا کیا کیا ملۍ

درایکھ میہ نش تہ ٲنہ لبن دہہہ ہیوتن وۅتھن
آیکھ میہ نش تہ دٲن تھرین تل گنداں چھہِ خواب

میہ تھوو ٲنہ لبن منز سہ ساتھ مٲنتھر دتھ
دپیوتھ بییہ تہِ گژھیا زانہہ یہ دستیاب وۅلو