گزر ژورِ ہند استعارہ

GUZAR

شہل تہ شوژ چھہ کاشر غزل وناں عازم
ویو تہِ نے تہ گُذر ژورِ ما انتھ ہیکہِ مال

(نیب شمارہ اول اکتوبر 1968)

 

یہ چھہ مظفر عازم سند اکھ مشہور شعر، یمیک چرچہ میٲنس لۅکچارس منز واریاہس کالس رود۔ اتھ منز یۅس کتھ وننہ ٲس آمژ سۅ  ٲس یتھہ کنۍ تہِ دلچسپ خاص کر تتھ وقتس منز ییلہ کاشرِ شاعری منز نویرہ رنگۍ واریاہ کینہہ لیکھنہ اوس یوان تہ نوۍ نوۍ تجربہ کرنہ رنگۍ مختلف ماخذن فایدہ تلنہ اوس یوان۔ مگر امچ دلچسپی ٲس امہِ کس انداز بیانس منز تہِ ۔ یہ استعارہ اوس شاعری ہندِ خاطرہ نو٘و تہ اتھ دورس منز ٲسۍ شاعر پننہ پننہ مقدورہ تہ مزاجہ مطابق  نوۍ نوۍ استعارہ ورتاونچ کوشش کران۔

وچھو ہے تہ اتھ منز چھہِ زہ بیان۔ اکھ  یہ دعوی زِ عازم چھہ شہل تہ شوژ کاشر غزل ونان۔ یہ دعوی چھہ یہندِ غزلہ چہ زبانۍ تہ استعارن ہندس حدس تام واریاہ صحیح۔ یہ اوس تمہ وقتہ تہِ صحیح ییلہ یہ شعر وننہ اوس آمت تہ از تہِ چھہ۔ حرف ڈاے چھیہ امچ گواہی دوان۔ زبانۍ ہندِ رنگہ شوژ کاشر غزل ونن والین شاعرن منز ہیکون اسۍ عازم سرس تھٲوتھ۔ یہ چھہ ساروے کھوتہ شوژ کاشِر زبان ورتاوان۔ میہ باسان یس غزل زبانۍ ہندِ رنگہ شوژ آسہِ، سہ آسہ شہل تہِ۔

دو٘یم بیان چھہ گزر ژورِ ہند۔ مال انن چھہ نہ گناہ مگر یہ مال گژھہِ جایز طریقہ اننہ یُن۔ اگر الیٹ سند قول نظرِ تل تھاوون (حالانکہ الیٹن تہِ چھہ یہ قول بیۍ سے ژورِ نِتھ ورتومت) جایز طریقہ چھہ نقل کرنہ بجایہ ژورِ انن۔ مگر گزر ژورِ ہند استعارہ چھہ اسہِ ونان زِ مال تارنہ خاطرہ چھہ اتھ ٹیکسہ ہن دنۍ ضروری۔ یہ ٹیکس چھہ شاعر نقل کرنہ بجایہ اتھ پننہ زبانۍ تہ روایتس ہم آہنگ بناوان۔ یہ چھہ اتھ کاشراوان۔

مظفر عازم چھہ پننہ شاعری منز اتھ اصولس سختی سان پابند باسان۔ امہ علاوہ چھہِ یم شعرن منز کتھ اشارن منز وننک قایل۔ یمہ ساتہ یم شعرہ نیبر کانہہ کتھ نثرس منز تہِ ونن اشارنے منز ونن یمہ کنی یہ سمجن کنہ ساعتہ مشکل گژھان چھہ زِ تم چھا الف ونان کنہ بے۔

دو٘یمہ بیانک بیاکھ دلچسپ نکتہ چھہ شود تہ شوژ مال نہ ویُن۔ اتھ منز چھہ طنزتہِ تہ پیراڈاکس تہِ ۔ امہ کین معنوی پہلوون چھہِ اسۍ سٲری بخوبی واقف۔

 

 

مظفر عازم صابنی یم لفظ تھاووکھ ییتہ نس بطور یاداشت محفوظ:

گۅڈہ گۅڈہ یم میٲنۍ اردو شعر اذان رسالس منز یا اورہ یور چھپے، تم تۯاوتکھ الگٕے۔ گۆڈنیک کٲشر غزل چھپیو کۅنگہ پوش رسالس منز۔ دلیل بنییہ، جرنلسٹ مقبول حسین اوس مے یار۔ (شاید آسہ ہے 1954\1955) ۔ مقبول حسینن وۆن یہ دمو کۅنگہ پوش کس اڈیٹر، فراق صٲبس۔ بہ اوسس ازۍکی پٲٹھۍ تیلہ تہ مندچھہ بتھ ۔ مقبولن نیونس پانس ستۍ فراق صٲبن گرہ، غزل پۆرم تمس نشہ، تمۍ کۆر پسند تہ چھپیوو۔ یہ وۆنمے امہ کنۍ زہ سہ غزل چھم نہ کنہ اتھہ یوان، مگر اکھ شعر تمہ منزہ یتھ فراقن داد دژوو سہ اوس اتھۍ ژٲنگس زُتنۍ ہاوان: لٹِس اکھ گاشہ لٕے آسٕم پننۍ وتھ پانہ پۯزلٲوم یتُے وۆن زُتۍنہ وولن تارکن ہند بوش اسمانن (مے اوس لیوکھمت تارکن ہند تاو، فراق صٲبن دۆپ بوش لیکھوس، یُتے چھم یاد)۔

رندِ بال درایس

رندِ بال درایس، اندِ کیا نیایس
ہندِ روس چھون چھم پھوت یے لولو*
انور وار

اتھ شعرس پیٹھ کمینٹ کران چھہ مظفر عازم ونان ز اتھ منز چھہ "اشارہ زِ کل زندگی کٔرتھ (رندِ نیرتھ) یہ حاصل تہِ چھہ نہ پانہ سے ٹارِ کھسان۔”

یہ چھہ امیک استعاراتی یا زیرین معنی یُس شعرس اندر لفظی طور موجود چھہ نہ بلکہ چھہ امہ موکھہ اتھ عطا کرنہ یوان یا یمن لفظن ہندِ ذریعہ ورگہ پاٹھۍ زاننہ یوان تکیاز اسہ چھہ یتھ کتھہِ پیٹھ سماجی طور اتفاق ز شاعر تہ خاص کر تمہ دورکۍ شاعر یمن اسۍ بعضے بلکہ اکثر صوقی شاعر تہ ونان چھہِ، چھہِ نہ وسی پایہ، پامال تہ معمولی کتھن ہند اظہار کران، شعرچ ظاہری صورت ٲسۍ تن زمینی، روح چھس آسمانی۔ انور وار سنز سٲرے شاعری چھیہ امہ دورکین تہ امہ قسمہ کین باقی تمام شاعرن ہندۍ پاٹھۍ زیریں سطحہِ ہنزے شاعری۔ یہ چھیہ امہ رنگہ روحانی شاعری، تکیازِ اتھ منز چھیہ ظاہری صورت بہانہ، مضمر معنی یعنی امیک روح اہم۔ بقول مظفر عازم ” یہ وونمت چھہ تمہ سیتۍ چھہ تتھ کن حیس گژھان یہ وننے تھوومت چھہ۔” یہ وننے تھٲوتھ چھہ، سہ چھہ انور وار سنزِ شاعری ہندس سیاقس منز تیوت نون زِ ونۍ متس کن چھہ نہ ظۅنے گژھان۔

میہ یمہ ساعتہ یہ شعر پور یا ییلہ بہ یتھۍ شعر پران چھس، خبر میہ کیازِ امہ کس معمولی معنیس لطف یوان، تہ یہ باسان اگر نہ امیک روزانہ تہ معمولی معنی قایم سپدِ، زیرین معنی کتھہ پاٹھۍ ییہ وجودس؟

شعر چھہ ظاہری طور ونان زِ ہند اننہ کہ بہانہ درایس گرِ، مگر یہ اوس بہانہ۔ واپسی پیٹھ پھوت خالی آسنہ کنۍ رندِ نیرُن تکیازِ پریتھ طرفہ چھیہ اچھی اچھ۔ نیاے چھہ شاعری منز زیادہ تر لولہ نیایی۔ سانس سماجس منز چھہ لول اکھ نیاے، اتھ کیا بنہ؟ اتھ شعرس منز چھیہ بیرونی سطحس پیٹھ سانۍ سماجی کہانی درج، یۅس میانہ خاطرہ تیژے اہم چھیہ ییژاہ اتھ کہانی منز مضمر بیاکھ کنایاتی کہانی چھیہ۔

اسۍ ہیکون نہ ظاہری پاس یکسر نظر انداز کٔرتھ۔

مگر یہ تہ چھیہ حقیقت زِ اگر نہ شاعری اسہِ معمولی پیٹھ کنہِ غیر معمولی سطحس سیتۍ زان کرناوِ، یہ ہیکہِ نہ بڈ شاعری بٔنتھ۔ یہ غیر معمولی سطح ہیکہ لفظی سطح علاوہ بیاکھ سطح ٲستھ، یہ چھہ نہ ضروری ز یہ کیا آسہِ لازما روحانی، فلسفیانہ یا مابعد الطبیعاتی۔

یہ تہِ چھہ اکھ سماجی مفروضہ زِ یۅس شاعری ظاہری سطح علاوہ اکھ زیریں سطح پیدہ کرِ، سۅ چھیہ بٔڈ شاعری۔

* میہ چھہ باسان عازم صابس چھیہ امہ بٲتہ کس دریفس منز غلطی گمژ، یہ ہیکہ مسودہ یا روای ین ہنز غلطی تہِ ٲستھ۔ وزنہ لحاظہ گژھہِ اکوے "لو” آسن، یتھہ پاٹھۍ تمو امہ کس گۅڈنکس شعرس منز دیمت چھہ۔ تمہ پتہ چھکھ پریتھ شعرس "لولو” پتہ کنہ تھوومت یس میانہ خیالہ صحیح چھہ نہ۔

دویمس شعرس منز گژھہِ "ساتہ نیک” بدلہ "ساعت نیک” آسن۔
پانژمس شعرس منز گژھہِ "پھۅلہ ون باغہ دل” بدلہ "پھۅلہ ون باغ دل” آسن۔
یم چھیہ کتابت چہ غلطی۔

تۅہہ نش ما کٲنسہِ جواب؟

"بٲتن الگ الگ تاریخ آسن چھہ نہ ضروری تکیازِ شاعری چھیہ نہ تاریخواری مطابق
مۅلۅن سپدان۔ وۅنۍ گوو فروعی معاملہ ؤنراونس چھہِ کم کاسہِ مدد کران۔”
— امین کامل، سرنامہ ‘یم میانۍ سۅخن’

"شاعری چھیہ دورن منز لیکھنہ یوان، دۅہن تہ ؤرین منز نہ۔ مگر یہ تہِ گژھہِ
یاد تھاوُن زِ داہ ؤری تہِ ہیکہِ اکھ دور ٲستھ، خاص کر تیزی سان
بدلونس وقتس منز۔”
— منیب الرحمن

شفیع شوقن لیوکھ کاشرِ ادبک تواریخ یُس اکھ بوڈ کارنامہ چھہ۔ میہ چھہ امیک گۅڈنیک ایڈیشن وچھمت یتھ منز واریاہ خٲمیہ آسہ۔ تنہ پیٹھہ آے اتھ زہ تریہ ایڈیشن تہ میہ چھیہ وۅمید گۅڈنکہ ایڈیشن چہ ساریۍ حٲمیہ آسن درو سپزمژہ تکیازِ شوقس ٲس پانہ تمن خٲمین پیٹھ نظر۔  امہ تواریخ علاوہ چھیہ ضرورت زِ کاشرِ ادبہ کس جدید دورس پیٹھ، یُس 1960 پیٹھہ 1980 تام جاری رود، ییہ تواریخی کٲم کرنہ۔ یہ کٲم گوژھ یونیورسٹی ہند کانہہ طالب علم انجام دین۔ یہ ہیکہِ پی ایچ ڈی یک تہِ موضوع بٔنتھ۔ 

کمۍ کیا لیوکھ تہ کر لیوکھ، پتھ کُن لیکھۍ متین چیزن کر تہ کٲژا تبدیلی آیہ کرنہ یمن کتھن پیٹھ گوژھ تحقیق سپدن۔ ادبچ روایت چھیہ نہ ٹی ایس ایلیٹ، جیرالڈ مینلی ہاپکنز سنزہ کتھہ چکاونہ سیتۍ قایم گژھان، نہ چھیہ سۅ خالص کتابہ چھپاونہ سیتۍ قایم گژھان یوت تام نہ اتھ تمام کارکردگی اندۍ اندۍ اکھ ادبی کلچر کھڑا گژھہ،ِ یوت تام نہ یمن چیزن پیٹھ کتھ گژھہِ۔ کتھ چھہ نہ مطلب صرف تجزیہ تہ تنقیدی مضمون بلکہ لیکھن والین، تہنزِ زندگی، تہنزن کتابن، تہندس کلامس متعلق  پریتھ کونہ کتھ سپدِِ۔

سانین بزرگ ادیبن چھہِ ہمیشہ پننین چیزن غلط سنہ تلہ کنہِ دینک عادت اوسمت۔ کلیات مہجورس منز چھہ واریاہن چیز ن غلط سنہ دِتھ، دینا ناتھ نادم سنزِ کتابہِ منز چھہ واریاہن چیزن ٲنی مٲنی سنہ دِتھ۔ تس چھہ نہ یہِ تہ یاد روزان زِ امہ برونہہ ہے میہ اتھۍ چیزس اکھ سنہ دیت، از کتھہ پاٹھۍ دمس بیاکھ سنہ۔ رحمن راہی یس اوس عادت یہ زِ سہ یُس تہ چیز کنہِ رسالس سوزان اوس تتھ اوس شیہ ؤری، داہ ؤری پرون سنہ تلہ کنہِ دتھ تھاوان۔ زن اوس سہ پنن کلام دہن ؤرین پتھ تھٲوتھ پرانہِ شرابکۍ پاٹھۍ مارکس منز کڈان۔ یہ اوس سہ اکھ سوچتھ سمجتھ  گپلہ کران۔ امین کامل، مظفر عازم ہوین شاعرن اوس نہ یہ مسلے تکیازِ یم ٲسۍ سیتی کتابہ چھپاوان۔ کاملن چھپاوِ 1972 تام ژور شعرہ سۅمبرنہ، مظفر عازمن تہ چھپاوِ 1974 تام زہ سۅمبرنہ، مگر باقی شاعر رودۍ کلامہ پتھ کن تھاوان۔ وجہ اوس صاف یتھ پیٹھ بییہ کنہِ ساعتہ کتھ گژھہِ۔

نادم، فراق تہ راہی رودۍ گوش دوان حالانکہ کلچرل اکاڈمی ٲس یہند کلام چھپاونہ خاطرہ ہمیشہ تیار۔ ٲخرس پیٹھ نیہ یمو کنی کتابا چھپٲوتھ، یمن منز چیزن سنہ سیتۍ سیتۍ لیکھکھ چھہِ،  یم اکثر غلط چھہِ۔ یہند یہ وطیرہ وچھتھ ژٔٹ کاملن سلی کتھ۔ تمۍ چھپٲو نہ 1972 پتہ کانہہ کتاب بلکہ سپد سہ 1980 پتہ کاشرِ ادبی ماحول تہ کشیرِ ہندِ ماحولہ نش یوت بدظۅن زِ تمۍ کور شاعری ہند کارخانے بند۔ صرف لیچھن تم خاص نظمہ مثلا تٲے نامہ، حمد تہ لڈی شاہ بیترِ یمن منز تمۍ دراصل اتھ صورت حالس پیٹھ افسوس ظاہر کورمت چھہ۔ اکہ قسمکۍ مرثی۔ ییلہ کامل  2001 منز امریکہ کس چکرس پیٹھ آو اتی نیو میہ تسند سورے کلام تہ کورم جمع کتابہ ہندس صورتس منز۔ نیب رسالہ منزہ تہِ کوڈم قصیدہ تہ باقی نظمہ یم 1972 برونہہ چھپیمتۍ ٲسۍ مگر کاملس اوس نہ کنہِ کتابہ منز شامل کرنک موقعہ میولمت۔ امۍ سنزِ عدم دلچسپی کنۍ لگۍ اتھ کتابہ چھپاونس پانژھ شیہ ؤری۔ تہِ ٲس نہ تس وۅنۍ یہ کلام چھپاونس منز دلچسپی۔

rah

کامل چھہ کاشر ادب رسالس 1967 منز پنن تازہ غزل بحثہ خاطرہ سوزان:

بہار پوک نہ اگر چانہِ ترایہ گرایہ میہ کیا
گلالہ داغ جگر ہیتھ چھہ جایہ جایہ میہ کیا

راہی تہِ چھہ غزل سوزان تہ اتھ تلہ کنہِ لیکھان 1958۔ دہہِ وہرۍ پرون یہ غزل چھپاونک کیا مقصد چھہ اوسمت؟ دہن ؤرین اوس نا امۍ کانہہ نوو غزل وونمت؟ کنہِ یہ اوس تیتھ زبردست غزل یس نہ اگر چھپہِ ہے تہ نقصان گژھہِ ہے۔ وچھو غزل کیا اوس یُس دہہ وہرۍ چھپاون ضروری اوس:

بلۍ تہِ نو آو یہ رنگ حسن خیالس یارو
داغ تھاواں ہا وچھم سونت گلالس یارو

اگر یہ غزل پزۍ پاٹھۍ 1958 ہک اوس۔ راہی سند یہ 1967 منز چھپاوُن چھیہ مندچھ۔ 1967 منز اوس کاشرس منز تہِ دۅہ کتہِ کور ووتمت۔

کامل چھہ سوزان اتھۍ رسالس 1976 منز پننۍ زہ غزل:

سمے صدا چھہ ژہاں سنگرن جگر کس پتھ
گگن ہوا چھہ تلاں تارکن مژر کس پتھ

تہ

لکھ چھہِ پھیراں عجیب باوتھ ہیتھ
معنہ روستے حسیں عبارتھ ہیتھ

راہی تہ چھہ پننۍ نطم "آورن” سوزان ، تلہ کنہِ چھس تاریخ لیکھان 1970۔ شیہ وری پتھ۔
راہی یس کیازِ پننین چیزن تلہ کنہِ تاریخ لیکھنک ضرورت پیوان؟ دویم کتھ سہ کیازِ ہمیشہ شیہ ؤری، داہ ؤری پرون کلام چھپاونہ خاطرہ سوزان؟

یم چھیہ سوچنس لایق کتھہ۔ تۅہہ نش ما کٲنسہِ جواب؟

اکھ پرانۍ چٹھیا ٲس

letter

تژھ تٍر یواں ٲس زِ رتھ شٹھہے رگن منز
اکھ پرانۍ چٹھیا ٲس ہتین دارِ مٔرم راتھ

یہ چھہ مظفر عازم سند اکھ زبان زد عام شعر۔

سیٹھا کم شعر چھہِ زبان زد عام گژھان۔ اکثر چھہِ امہ مۅکھہ یاد تھاونہ یوان یا روزان زِ تم چھہ اکس بییس موقعس پیٹھ بکار یوان۔ زبان زد عام گژھنک وجہ چھہ عموما شعری حسن کم تہ اکار بکار ینچ قابلیت زیادہ آسان۔ مثلا یہ شعر۔
یاد ماضی عذاب ہے یارب
چھین لے مجھ سے حافظہ میرا

یہ شعر چھہ ضرب المثل بنیومت تکیازِ اتھ منز چھہ انسانی تجربک اکھ تیتھ پزر موجود یس اکثر اوقاتن پیٹھ سانہِ احساسچ ترجمانی کران چھہ۔مگر اتھ منز چھہ نہ خیالہ کہ ورتاوہ علاوہ بییہ کانہہ شعری حسن یا خوبی۔ خیالن ولگیتُن دین چھہ نہ یکسر شعری عملہِ نیبر تکیازِ امہ سیتۍ چھہ کُنہِ معمولی خیالس منز کانہہ غیرمعمولی یا بالکل نوو پہلو نیران یمہ کنۍ پرن والۍ سندس ذہنس منز تعجب، سوال، تجسس، تحیر ، بیترِ ہوۍ جذبہ پیدہ گژھان چھہِ۔ پیٹھمس شعرس منز چھہ سوال پیدہ گژھان زِ یہ شخص کیازِ چھہ پتھ کال چہ ژیتہ آوری سیتۍ یوت پریشان؟ اتھ شعرس چھہِ واریاہ معنی ممکن۔ متکلم سند تکلیف چھہ یا تہ اوہ مۅکھہ زِ تسند پتھ کال چھہ تسندس ازکالس برعکس (1) سیٹھا مارۍ موند اوسمت، نتہ چھہ (2) سیٹھا تکلیف دہ اوسمت یس نہ تس ونیک تام مشان چھہ۔ یتھے پاٹھۍ چھہِ عذاب، یارب تہ حافظہ ہوۍ لفظ معنی چہ باریکی منز اضافہ کران۔ شعرس منز یتھہ پاٹھۍ اکہ کھۅتہ زیادہ (تہ بعضےمتضاد) معنی پیدہ کرنۍ تہِ چھہ اکس حدس تام شعری حسن ماننہ یوان۔ امہ خیال آرایی تہ کارآمدی ورٲے چھہ نہ اتھ شعرس منز بییہ کانہہ زبردست شعری حسن۔ اتھ مقابلہ چھہ مظفر عازم سند شعر محسوساتن ہند دنیا سٲنس ذہنس منز آباد کران۔

عازم سندس شعرس منز تہِ چھہ اردو شعرس رلوُن مگر برعکس خیال ۔ اظہار تہِ چھہ نہ اردو شعرکۍ پاٹھۍ سیدِ سیود بلکہ چھہ اکھ منظر اچھن برونہہ کنہِ واقع سپدان تہ تٍرِ ہند تہِ چھہ کم کاسہ احساس گژھان۔ شعرس منز چھہ لغوی تہ استعاراتی معنین ہند سنگم۔لغوی سطحس پیٹھ چھیہ شعرس منز وندہ کالچ تہ ناداری یا غفلتچ عکاسی۔کریٹھ راتھ۔ دارِ گول یلہ۔ تٍر۔ اخبار کاغذ تہِ نہ موجود۔ مجبوری۔ یہ چھہ اکھ عام ، ممکن تہ سطحی صورت حال ۔ اتھ منز چھہ ناسٹالجیا۔ استعاراتی سطحس پیٹھ چھہ یمنے عام چیزن منز علاوہ (تہ الگ) معنیچ دریافت سپدان۔ استعاراتی معنی چھہ نہ لغوی معنی یکۍ پاٹھۍ مقرر آسان۔ لہذا ہیکو اسۍ تٍرِ، دار، چٹھہِ واریاہ معنوی تعبیر کٔرتھ۔ یعنی تٍر ہیکہ اتھ شعرس منز نامساعد حالات یا اشکال تہِ، دٲر ہیکہ نظریہ یا زندگی ہند کانہہ تجربہ تہِ ٲستھ۔

شعرہ کین لفظن ییلہ اکہ اکہ سنان چھس، معنی چہ کٲژٲ باریکی چھیہ برونہہ کُن بوان۔ "اکھ پرانۍ چٹھیا” یا "دارِ مٔرم راتھ” یم لفظ کوتاہ چھہِ باوان۔ مثلا
اکھ: کُنی، غیر معین۔
پرانۍ: مشراونہ آمژ، شاید وقت بدلنس سٍتۍ بے مصرف، یا مۅلج ۔
چٹھیا: اکے، کتھہ تام پاٹھۍ پتھ کن روزمژ، اکھ بلا تعین خط۔
ٲس: پانے ٲس، شاید پیتھ، رژھراونہ ٲس نہ آمژ ، عدم دلچسپی۔
مٔرم: تکلیف دہ عمل، ناقدری، احساسہ روس۔
راتھ: مشکل وق، لاتعلقی۔

Image

نوٹ: مظفر عازم چھہ کاشرِ شاعری ہنز اکھ سنۍ تہ گنۍ آواز، یمو پنن سفر جدید کاشرِ ادبہ کین تھنگین لرِ لور شروع کور تہ تمن لرِ لور پٔکتھ نظم تہ غزل دۅشونی صنفن منز اظہارکۍ نوۍ نوۍ پڑاو پرٲوۍ۔ بہ چھس نہ فی الحال اتھ لایق زِ بہ کرہ یہنزِ "حرف ڈاے” تازہ شعرہ سۅمبرنہِ پیٹھ کانہہ تبصرہ، البتہ ونہ بہ زِ اتھ کتابہِ منز چھیہ بے مثال غزلو علاوہ ویتھ، الف،دم، زاڈیک پوش، سفراتھ ہشہ کامیاب ترین نظمہ تہِ شامل۔ یہند غزل چھہ شروع پیٹھے اکھ نون انہار ہیتھ اوسمت، یمچ مثال یہند بنم شعر چھہ یتھ پیٹھ میہ پیٹھم کینہہ لفظ نیب 27 منز شایع کرۍ۔ افسوس چھہ زِ سٲنس اکس بڈس نقادس آو نہ گنتی ہندین سانین شاعرن منز غزلہ کس سفرس منز عازم صٲب کُنہِ پڑاوس پیٹھ نظرِ۔ کشمیر یونیورسٹی ہندس غزلک فن سیمینار منز "کاشرِ غزلک سفر، کینہہ ننۍ پڑاو” کلیدی مقالس منز  پننہِ غزلہ خاطرہ اکہِ الگ مقامچ گنجایش کڈنہ خاطرہ چھہِ امۍ نقادن غزلکۍ شاعر پننہ آسایشہِ مطابق ترین درین منز باگراوۍ متۍ یمن منز شاد رمضان، عزیز حاجنی، مجروح رشید تہ برجناتھ بیتاب ہوۍ جونیر شاعر تہِ اکس پڑاوس پیٹھ  براحمان چھہِ، مگر مظفر عازم چھہ نہ تریشونی درین منز کنہِ نظرِ گژھان۔ یہ چھیہ افسوسچ کتھ۔