پھیکس پیٹھ اتھہ – تریہ واقعہ

مستند تلفظ

آل احمد سرور اوس کشیمر یونیورسٹی ہندِ اقبال انسٹی چیوٹک سربراہ۔ شاید اوس میہ یمن دۅہن یونیورسٹی اندر ایم اے انگلشس منز داخلہ۔ آل احمد سرورن کور اکھ سیمنار منعقد یتھ منز نیبرمین اندرمین سکالرن سیتۍ رشید نازکی صٲبن تہِ مقالہ پور۔ سیمنارس منز ٲسۍ مسعود حسین خان تہ مدعو، یم ٲسۍ میہ علی گڈھہ استاد رودۍ متۍ۔

نازکی صٲبنس مقالس دوران اوسس بہ بۅنہ کنہِ یمنے نش بہت۔ یم ٲسۍ میہ سیتۍ اورچ یورچ کتھا کتھا کران۔ نازکی صٲبن اوس مقالہ پران پران یہ منظر وچھمت۔ سیمنارس ییلہ چایہِ ہندِ خاطرہ بریک میج، نازکی صٲب آیہ میہ نش تہ تھووکھ میٲنس پھیکس پیٹھ اتھہ تہ پرژھکھ ، "ییلہ بہ مقالہ پران اوسس یہ مسعود حسین خان صٲب کیا اوسے ژیہ پرژھان؟”

یمن ٲس نہ خبر زِ خان صٲب اوس میہ استاد۔

بہ اوسس یمن دۅہن رژھ کھنڈ شیطانی منز۔ میہ دوپ یۅہے چھہ موقعہ۔ میہ وونس، "کہنی نہ حض، یم ٲسۍ ونان یہ مقالہ پرن وول کس چھہ تہ میہ وونمکھ یم چھہِ کشیرِ ہندۍ نامور ادیب۔ تورہ حض دوپکھ نہ صرف چھہ یہند مقالہ عالمانہ بلکہ چھہ یہند تلفظ تہِ سیٹھا معیاری تہ مستند۔ میہ چھہ نہ کشیرِ منز یُتھ تلفظ کٲنسہِ وچھمت۔”

میون اوس یہ وننے یوت زِ نازکی صٲبن اون کنے وۅٹہِ میہ ٹیبلہ پیٹھہ چایہ پیالہ تہ دوپکھ، "رٹھ چیہ چاے”۔

اسۍ چھہِ دۅشوے کھڑا کھڑا چاے چیوان زِ نازکی صٲبس پییہ کس تام پیٹھ نظر۔ امۍ تھوو میہ پھیکس پیٹھ بییہ اتھہ تہ نیونس امس شخصس نزدیک تہ پرژھن، "اچھا کیا اوسے ژیہ یہ مسعود حسین خان ونان؟” میہ نی لفظ بہ لفظ پننۍ شیطانی دہرٲوتھ۔

نازکی صٲبن تروو یہ شخص اتی تہ نیونس بییس نفرس کن تہ پرژھن بییہ یۅہے سوال۔ میہ دوپ ہے ہے بہ کیا سا پھسیوس ولٹہ پاٹھۍ۔

امہ پتہ کینژس کالس ییلہ تہِ میہ نازکی صٲب کٲنسہِ شخصس تھی یونیورسٹی منز سمکھہ ہن، تم ٲسۍ میہ یوہے سوال پرژھان!

نازکی صٲبس چھہ پزۍ پاٹھۍ قابل رشک تلفظ!

"وچھ کیا جان!”

بیاکھ شخص یُس یونیورسٹی منز میٲنس پھیکس پیٹھ اتھہ تھاوان اوس، چھہ قاضی غلام محمد۔ فرق ٲس یہ زِ رشید نازکی صٲب ٲسۍ میون سویچ آن کرنہ خاطرہ پھیکس پیٹھ اتھہ تھاوان ییلہ زن قاضی صٲب شاید پنن سویچ آن کرنہ مۅکھہ میٲنس پھیکس پیٹھ اتھہ تھاوان ٲسۍ ۔

ملاقاتس دوران ٲسۍ یم غالب بوزناوان، اکثر فارسی یُس نہ میہ تمن دۅہن زیادہ سمجھ یوان اوس۔ یمن سیتۍ ٲسۍ پننۍ شعر تہِ بوزناوان۔ کتھ یۅس دہراونۍ لایق چھیہ سۅ چھیہ یہ زِ کنہِ تہِ شعرس پیٹھ میانہِ ردعمل برونہے ٲسۍ یم پانے ونان۔ "وچھ کیا جان! وچھ کیا جان! وچھ کیا جان!”

ملاقاتس دوران ٲسۍ یونیورسٹی گراونڈکۍ اکھ زہ چکر لگان یتھ دوران بہ شعرو کھوتہ زیادہ "وچھ کیا جان! وچھ کیا جان!” بوزان اوسس۔ ییژِ لٹہِ سمکھہو نوین شعرن سیتۍ ٲسۍ پرانۍ شعر تہِ بوزنۍ پیوان۔ شاید اوس نہ تمن یادے آسان زِ میہ چھہِ امہ برونہہ تہِ تمن سیتۍ یونیورسٹی گراونڈکۍ چکر لگٲوۍ متۍ۔

قاضی صٲبس ٲسۍ سیٹھا کھسۍ پایہ شعر یاد۔ وچھ کیا جان! وچھ کیا جان!

اور اس کے بعد میں

اکہِ رٲژ سیٹھا ژیرۍ ٲسۍ اسۍ کینہہ نفر زبیر رضوی سندِ گرِ راج باغہ نیرتھ لال منڈی کن پکان۔ میہ چھہ نہ یاد سانہِ اتھ چھۅکہِ منز کُس کُس اوس، البتہ شجاع سلطان اوس تہ تس سیتۍ فاروق آفاق تہِ۔ اسۍ چھہِ کمے پہن کتھہ کران، زیادہ کتھہ اوس شجاع کران۔ پیٹھہ اوس سہ مست۔ تھوون میہ پھیکس پیٹھ اتھہ تہ پرژھن، "پینٹنگہِ منز کس چھہ کشیرِ منز نمبر اول؟” میہ اوس نہ زانہہ امتحان خۅش کران۔ میہ دوپمس پتاہ چھم سا۔ دوپن، کیا سا چھکھ ونان۔ پینٹنگ میں نمبر اول شنتوش ہے۔ جی آر سنتوش۔ میہ تہِ اوس یۅہے ناو ذہنس منز آمت مگر وونمس نہ۔ ونہِ اوس میہ "آ "وننے زِ اتھۍ شہس منز وون امۍ "اور اس کے بعد میں۔”

کینہہ قدم پکٔتھ تہ خلقن پیٹھ تبصرہ کٔرتھ ووتھ یہ بییہ پھیکس پیٹھ اتھہ تھٲوتھ، ” کشیرِ منز کُس چھہ بوڈ شاعر؟” یہ سوال اوس ویسے تہِ مشکل۔ میہ کٔر ژھۅپہ۔ میہ دوپ فاروق آفاق ونیس۔ تمۍ تہِ وونس نہ کینہہ، کنہِ ووننس واریاہ چھہِ، یاد چھم نہ۔ شجاع ووتھ پانے۔ "کامل۔ امین کامل۔” فاروق آفاقن وونس شاید میانہِ مۅکھہ "تتھ کیا شک چھہ۔”

ونہِ اوس تس یہ جملہ ٲسہ منزہ درامتے زِ یہ ووتھ بییہ، "اور اس کے بعد میں۔”

یوتام اسۍ بیون بیون درایہ، امۍ ٲسۍ بییہ تہِ واریاہ "اور اس کے بعد میں” ونۍ متۍ یم وۅنۍ میہ یاد چھہِ نہ، فاروق آفاقس ما آسن یاد!

شجاع سلطان اوس سیٹھا ذہین تہ ہنرمند شخص یمۍ یمن دۅشونی خصوضیژن زیادہ کٲم ہیژ نہ۔

ملالہ موت ادب

کاشر ادب چھہ ملالہ موت ادب! یہ چھہ نہ معرکہ آرایی ہند ادب، یہ چھہ غیر احتسابی ادب، یہ چھہ نہ تنقید شناس۔یہ چھہ نہ تعریف گذار ادب تہِ۔ پتھ کیا تہ کیازِ؟ پٔرو برونہہ کن۔

بہ تہِ چھس کاشر مگر بہ چھس زندگی ہندس اکس بڈس حصس دوران مختلف لوکن تہ کلچرن منز رودمت تہ تمن سیتۍ چھس ووتھمت بیوٹھمت۔ مقصد چھہ نہ کاشرۍ تنقیدک ہدف بناونۍ مگر میہ چھہ احساس گژھان زِ کاشرۍ تنقیدس تہِ کھوژان تہ تعریفن تہِ۔ تنقید کرنس چھہِ نہ کھوژان بلکہ گوژھکھ نہ کانہہ تنقید کرُن۔اکھ لۅکٹ کمیونٹی آسنہ کنۍ چھہِ لہازا تنقید کرنس تہِ لوبے ہیوان۔ کتھ چھیہ نہ زِ باقی کلچرن منز کیا چھہ تنقید پسند کرنہ یوان۔ سارنے چھہ شرارت کھسان مگر کینژن منز چھہ برداشت کرنک مادہ زیادہ آسان۔ کاشر چھہ سٲری تعلقات ختم کرنس پیٹھ واتان۔ یہ گوو اکھ پاس۔

دویم پاس چھہ یہ زِ کاشر چھہ نہ تعریف تہِ یژھان کرُن۔ یژھ کتھ چھیہ نہ زِ یہ کیا چھہ نہ پننۍ تعریف یژھان، بلکہ چھہ ہمیشہ یہے وۅمید ہیتھ روزان زِ پریتھ شخص گوژھم تعریف کرُن، تعریفن ہند کانہہ وجہ آسہِ یا نہ آسہِ، مگر پانہ کرِ ہے نہ کٲنسہِ تعریف۔ کٲنسہ تعریف کرُن چھہ کاشرس سیٹھا لوژ کٲم باسان۔ ممکن چھہ کنہِ مصلحژ تل ما کرِ کنہِ ساعتہ کٲنسہِ تعریف، شاید امہ مۅکھہ زِ پتاہ چھیم یم چھہِ اپزی تہ اتھ چھہ نہ کانہہ حرج۔ مگر کٲنسہِ حقیقی تعریف کرنۍ چھہ نہ امس قبول۔ شاید چھہ امس احساس کمتری گژھان، شاید چھہ امس عذروُن یوان۔

سون ادب چھہ نہ امہ جذباتی صورت حال نش خالی۔ کنہِ جایہ چھہ نہ کٲنسہِ ہندۍ دل کھول کے تہ شوبہ نۍ تعریف میلان۔ مصلحتی تعریف چھہِ عام۔ بییہ چھہ بیاکھ چیز زِ کنہِ ساعتہ چھہِ کٲنسہِ ہندۍ تعریف صرف پنن بجر ہاونہ خاطرہ کرنہ یوان۔ مطلب چھہ نہ تعریف بلکہ پنن بجر ہاون آسان۔ تنقیدس تہِ چھہ لوبے ہینہ یوان۔ کٲنسہِ اگر کانہہ کتھ تنقیدی اندازہ ونۍ تتھ منفی بنٲوتھ جایہ جایہ پھرنس چھہِ پنن پاس ٹایم زانان۔ یُس امہ تنقیدک ہدف آسہِ سہ چھہ اتھ افواہ بازی پیٹھ یاتہ پنن پان مظلوم بنٲوتھ پیش کران، نتہ پننۍ سٲری جنگی حربہ زیر عمل انان تہ اتھ پانس خلاف بٔڈ بارہ ژۅے مانان۔

ادب چھہ تعریف تہِ منگان تہ تنقید تہِ۔ یمو دۅیو کارکردگیو روس چھہ ادب لاتعلقی ہند شکار گژھان!

گرد تنییہ

میہ ہوۍ چھہِ واریاہ یمو سلہِ پیٹھے شعر وننۍ شروع کرۍ مگر کتابا وتابا چھٲوکھ نہ کینہہ۔ باقین ہند چھیم نہ پتاہ البتہ میانہِ امہ صورت حالکۍ چھہِ تریہ وجہ۔

ساروے کھوتہ بوٚڈ تہ عجیب وجہ اوس یہ زِ بہ اوسس اکس ناودار شاعر سند نیچو تہ ادبس منز پننہ ذاتی، خودمختار تہ سنجیدہ دلچسپی باوجود ٲس ادبی حلقن منز میانۍ زان تہ آوبھگت صرف تہ صرف مالۍ سندی حوالہ۔ اتھ صورت حالس منز پنن پان پروجیکٹ کرُن اوس میہ عجیبے باسان۔ امہ کنۍ روز میانۍ ادبی کارکردگی ذاتی سطحس پیٹھ تہ مخصوص دوستن ہندس دایرس تام لۅکٹس پیمانس پیٹھ محدود۔

دویم وجہ چھہ پننین لیکھنہ چین کوششن متعلق میون پنن غیر مطمین تہ غیر تشفی بخش رویہ۔ پننس کنہِ چیزس سیتۍ روز نہ میانۍ دلچسپی قایم تکیازِ یُس تہِ چیز لیوکھ، اکھ زہ پچھ گژھتھ کھوٚت نہ پانسے ٹارِ۔ یُس تنقیدی شعور شاعری پرنہ بدلہ ارود تہ انگریزی تنقید پرۍ پرۍ میہ پانس اندر ژیول، سہ رود ہمیشہ میانین تخلیقی صلاحیتن ٹھۅلہِ۔ بلاے اتھ زیادہ پرنس۔ پننین چیزن سیتۍ امہِ میانہِ جلدے راون واجنہِ دلچسپی کنۍ ہیوکس نہ بہ کانہہ چیز رژھرٲوتھ۔

تریم وجہ چھہ یہ زِ میانۍ زندگی چھیہ 1980 پیٹھے یتھ دمس تام اکس عجیب گردشس منز ۔قدم اکس جایہ ٹھہراونک چھہ نہ کانہہ موقعہ، میانۍ زندگی چھیہ واقعی ژلونین ژہین ہنز سوارۍ۔ اکہ لٹہِ کٔھستھ چھہ نہ وسنک کانہہ پاے۔اکاے صورت چھیہ باقی۔ سہ گوو دب۔ یمہ ساعتہ لگہِ پانے یمہ پتھر لاینہ۔ توہہ تہِ کرو تمہ ساعتہ خبر۔

پریتھ شاعرس چھہِ پننہ زندگی منز پنداہ، وُہ یا پنٕزہہ وری تم یوان یمن منز سہ پنن بہترین ادبی سرمایہ پتھ کن تراوان چھہ۔ حالانکہ اکثر شاعر چھہِ زندگی ہندین ٲخری دمن تام لیکھان مگر سہ چھہ صرف پتہ کرافٹ آسان۔ تتھ منز چھہ نہ سہ روح، سہ جود، سۅ تازگی آسان یۅس تہندِ بہترین وقتچ پہچان آسان چھیہ۔ شاعر چھہِ پننس شعری سفرس منز اکہِ وقتہ تتھ مقامس پیٹھ واتان ییتہ تم کنہِ تہِ خیالس، کنہ تہِ چیزس کرافٹ کہ مدتہ شعر چھہِ بنٲوتھ ہیکان۔ تہنزِ شاعری ہند جود تہ تازگی چھہِ وقتس سیتۍ سیتۍ راوان مگر کرافٹ چھہ تیتھ چیز اگر اکہ لٹہِ اتھس منز آو، یہ آو ہمیشہ خاطرہ۔

سانۍ واریاہ شاعر چھہ وۅنۍ صرف کرافٹ ورتاوان۔ ہمعصرن متعلق، ہمعصر بزرگن متعلق نہ، بلکہ یمن برونہہ کنہِ ونہِ واریاہ میدان آسہِ، تمن متعلق کانہہ فیصلہ صادر کرن چھہ مشکل مگر بہ ہیکہ فی الحال یہ ؤنتھ زِ سون ہردلعزیز شاعر رفیق راز تہِ چھہ وۅنۍ کرافٹے ورتاوان۔ یُس جود تہ تازگی تسنزِ شاعری منز 1980 پیٹھہ 1990 تام ٲس، سۅ چھیہ وۅنۍ کرافٹس تل سۅتیمژ۔

نادم سند جود اوس 1950 پیٹھہ 1965 تام، کامل آو راہی یس پتہ مگر امۍ سنزِ شاعری ہند جود رود 1960 پیٹھ 1979 تام جاری، راہی تہ فراق سنزبہترین شاعری آیہ 1970 پیٹھہ 1985 تام برونہہ کن، حالانکہ یم ٲسۍ واریاہ کالہ پیٹھہ شاعری کران۔ یہ دور چھہ کٲنسہ شاعر سنزِ زندگی منز ژیرۍ یوان۔ دنیا کس ادبس منز چھیہ یژھہ مثالہ موجود۔ کاشرس منز چھیہ قاضی غلام محمد سنز مثال، امۍ سنزِ شاعری ہند جود گوو ژیرۍ قایم تہ رود 1980 پیٹھہ 1990 تام، سیٹھا ژھوٹ دور۔

امہ رنگہ ییلہ بہ پانس کن نظر تراوان چھس تہ یہ اقرار کرن تہِ چھہ ضروری ز کینژن میہ ہوین تک بندن ہنزِ زندگی منز چھہ نہ یتھ کانہہ دور آسانے، لۅکٹس پیمانس پیٹھ تہِ نہ۔ مگر ادبک کاروان چھہ نہ پیٹھم کژتام شاعر برونہہ پکناوان، یم چھہ امہ کاروانچ شوب ضرور بنان، مگر کاروان بناون والۍ چھہِ میہ ہوۍ کٲتیا شاعر/تک بند آسان یم پننہِ حوصلہ تہ سرگرمی کنۍ کاروانس اکھ باضابطہ شکل دوان چھہِ۔ زندہ باد تم ساری ادیب یم کاروانس منز گردِ بزۍ گژھتھ پننۍ خولہ خط تام راوراوان چھہ!

بقول کامل:
گرد تنییہ تہ اوسس بہ پایمال ہیے