پی این پشپ

پی این پشپ زاے 1917 منز تہ 1996 منز گیہ سرگواسۍ۔ خبر کٲتہو ازکیو ادیبو چھہ تہند ناو بوزمت؟ خبر کٲتہن چھہ یہند ملاقات نصیب سپدمت؟ بہ چھس نہ کالج کٔرتھ کشیرِ زیادہ رودمت، تاہم یمن سیتۍ چھہ میہ اکاڈمی، ریڈیو تہ یونیورسٹی منز منزۍ منزۍ ملاقات سپدمت۔

اکھ چیز یس میہ خاص طور یاد پیوان چھہ، یم ٲسۍ اتھہ واس سیٹھا چیرہ کران، میانۍ پاٹھۍ ٲسۍ نہ تھوکمت اتھہ بیہ مٲل پاٹھۍ دوان، حالانکہ امہ وقتہ ٲسۍ یم بزرگی ہندین ایامن منز داخل سپدۍ متۍ۔ پشپ اوس زبردست متحرک شخصیتک مالک۔ ہمیشہ اپ بیٹ، سیٹھا انرجی وول ادیب۔ کتھہ اوس تیز تیز تہ پیوٹھس پیٹھ کران۔ زندگی متعلق پرامید نقطہ نظر تھاوان۔

pushp
از پییہ میہ یم یاد۔

پی این پشپ سنز دلچسپی ٲس زبان، لسانیات، تحقیق، تنقید، شاعری، بیترِ۔ سیٹھا پورمت شخص۔ پشپ چھہ ترقی پسند دورس منز پزۍ پاٹھۍ کاشرِ زبانۍ لول برن والین کژن تام نفرن منز سرس، خاص کر نثر لیکھن والین ترین ژون شخصن منز اوس سہ پیش پیش۔ ترقی پسند دورس منز اوسے نہ کانہہ نثر لیکھان۔ افسوس ز تمن لوکن ہند ذکر چھہ سانین تذکرن تہ تواریخن منز میلان یم نہ اتھ دورس منز کاشرس ادبی سرمایس انزۍ منزۍ تہِ ٲسۍ گمتۍ۔ حالانکہ پشپ اوس نہ باقین ہندۍ پاٹھۍ معلوماتی مضمون لیکھان یۅس محض ترجمہ بازی ٲس۔ پشپ سند مطالعہ اوس کاشرِ زبانۍ تہ ادبہ کس تجزیس تہ تبصرس منز نون نیران۔ سہ اوس نظریاتی کتھو کھوتہ زیادہ کاشرِ ادبہ کس متنس پیٹھ کتھ کران۔ امس ہوۍ ہمہ جہت ادیب چھہ سیٹھا کم نظر گژھان، یمن شاعری پیٹھ تہ جان نظر آسہ تہ تنقیدس پیٹھ، یمن پرون متن تہ پرن تہ شیرن تگہ تہ، نوین ادبی نہجن پیٹھ کتھ تہ تگہ کرنۍ۔ جدید دورس منز تہِ رود پشپ نوو نوو سوچ ہتھ سیمنارن منز شرکت کران۔ کاشرین ادیبن منز اگر کانسہ لسانیات کین بنیادی تصوراتن ہند ہمعصر تہ صحیح علم اوس، سہ اوس صرف تہ صرف پی این پشپس۔

پشپ سندِ تنقیدی شعور ک پتاہ چھہ تمۍ سندِ 39 صفحن ہند تمہِ مضمونہ پیٹھ لگاون آسان یُس تمو نادم صٲبنہ شاعری پیٹھ "نادم سندۍ باوژ انہار” (مطبوعہ شیرازہ نادم نمبر) عنوانہ لیوکھ۔ امہ مضمون چھہ پشپ سند اردو تہ کاشرِ ادبک ، نادم صابنہِ شاعری ہند، تہ ہمعصر تنقیدی تصوراتن ہندمطالعہ نون نیران۔ مثالہ پاٹھۍ نیون یہ جملہ:

"توتہِ پیوو نادم جلدے پایس تہ نوۍ نوۍ تجربہ کران ووت ‘دپنہ’ پیٹھہ ‘باونس’ تام۔ ‘سۅوز ‘نظم چھیہ نادم نہِ امہِ باوژ سفرہ کس گۅڈہ منزلس گاشراوان۔”

خبر پی این پشپس پیٹھ چھا تمس زیادہ بہتر پاٹھۍ زانن والۍ تہ تسندین لیکھن سیتۍ زیادہ واقف کٲنسہ ادیبن کانہہ مضمون لیوکھمت؟

پکان دورِ فلک

memory
زندگی منز اگر میہ کنہِ چیزک افسوس چھہ، سہ چھہ میہ پننہِ یاداشتک۔ میون یاداشت چھہ ہمیشہ پیٹھہ کمزور تہ ژلہ ون رودمت۔ پننۍ یہے کمزوری مدنظر وون میہ فیاض دلبرس، یمس زبردست یاداشت چھہ بصری تہِ تہ لسانی تہِ، زِ تس پزن دوستن تہ واقعاتن متعلق پننۍ یاداشت رژھراونۍ یمن ہند سہ اکثر ذکر کران اوس۔ شروعات گیہ شورا بشیر سندِ پیٹھہ۔ اچھا فیاضن یاداشت چھہ کمال، پیٹھہ چھہ سہ تیتھ کتھہ گور تہِ یُس اکثر تھیکان تہِ چھہ تہ مبالغہ تہِ چھہ کران۔ کتھن مزہ کھالنہ مۅکھہ اگر ٹر تہِ وننۍ پینس، واے برِ نہ۔ سہ چھہ پننہِ یاداشت کس وفورس انزۍ منزۍ گژھتھ وۅٹہ تہِ تلان تہ زیوِ تہِ ٹاس کڈان۔ سہ چھہ اتھ پیٹھ پننۍ مخصوص چھاپ تراوُن یژھان۔

فیاضنۍ یہ خوبی ژینۍ میہ گوڈنچہ لٹہِ تمن ملاقاتن منز یم سرینگر کافی ہاوسس منز الغٲبہ سپدان آسہ۔ مگر تمن دۅہن اوس نہ میہ یاداشت چہ اہمیژ ہند یوتاہ ظۅن۔ ملاقاتہ روزہ دلہِ منز تہِ کم کم مگر جاری تہ یور امریکہ یِتھ گوو فون کہ ذریعہ فیاض نہِ امہ خوبی ہند زیادہ احساس تکیازِ وۅنۍ اوس فیاض نظرن دور تہ صرف اوس فونس پیٹھ امۍ سند یاداشت بولہ کران۔

ادب چھیہ تژھ اکھ انسانی کارگزاری یمیک تھر تہِ یاداشت چھہ تہ نانک تہِ یاداشت۔ یہ چھہ یاداشتے یُس فن پارہ تخلیق کران چھہ تہ امیک فہم تہِ عطا کران چھہ۔ یمن درمیان یۅس لسانی ہیت چھیہ سۅ تہِ چھیہ یاداشت کس زور پیٹھے قایم تہ دایم۔ یاداشت، ادراک تہ تخیل یودوے تریہ الگ ذہنی عمل چھہِ، مگر ادبس منز چھِہ یم تریشوے اکھ اکۍ سند اتھہ رٹتھ فن پارچ قوت ہرراوان۔۔ یاداشت ورٲے نہ ہیکہِ سانۍ شخصیت بٔنتھ نہ تواریخ تہ نہ وقتک تسلسل۔ ادبچ چھیہ نہ کتھے۔

(پکان دورِ فلک، اکھ اقتباس)

رحمن راہی تہ بوڈ نثر نگار؟

میہ چھہ تعجب سپدان ییلہ یونیورسٹی ہندِ کاشرِ ڈپارٹمنٹکۍ کینہہ پروفیسران رحمن راہی یس اکھ بوڈ نثرنگار قرار دوان چھہِ۔ راہی یس چھہ نہ اکھ جملہ سیود لیکھن تگان، بوڈ نثر نگار کپارۍ بنیوو؟ بۅنہ کنہِ چھیہ مثالہ، جملہ پتہ جملہ، غلط زبانۍ ہنزہ یم اکی مقالہ منزہ کڈنہ آمژہ چھیہ۔ پانے کٔرو فیصلہ۔

rah

راہی: موجودہ وُہمہِ صدی ہندین پتمین کینژن دہلین دوران آو کاشرِ شاعری ہند وزنی صورت حال خاصہ پاٹھۍ زیر بحث۔
منیب:  "غیر موجودہ وُہم صدی” تہِ چھا کانہہ چیز؟ یا ونو "موجودہ صدی” نتہ "وُہمہِ صدی” ہندین پتمین کینژن دہلین دوران ۔ اتھ جملس منز چھہِ شروعکۍ لفظ "موجودہ وہمہِ صدی ہندین” بالکل غیر ضروری۔ اگر یہ تحریر وہمہ صدی منز لیکھنہ آو یہ ونن چھہ کافی زِ "پتمین کینژن دہلین دوران آو کاشرِ شاعری ہند وزنی صورت حال زیر بحث”۔پرن وول چھہ نہ کنہِ جنگلہ منز آمت پوش زِ تس کیا چھیہ نہ پتاہ زِ موجودہ صدی چھیہ وہم صدی۔ امہ علاوہ، "وزنی صورت حال”  چھہ غیر فصیح، "وزنک صورت حال” چھہ فصیح۔ اسۍ ہیکو "عروضی صورت حال” ؤنتھ مگر "وزنی صورت حال” نہ تکیاز "وزنی” چھہ گوب آسنہ کس معنیس منز کاشرس منز رایج۔

راہی:سانین کینژن عزیزن سپد اردو کہِ توسلہ عربی فارسی عروضک کم یا زیادہ تعارف حٲصل تہ امچ بظاہر مشینی ضابطہ بندی باسے یکھ تیژ معتبر تہ ورتاوہ کنۍ تیژ معین زِ تمو ہیوت امیک یہِ دپۍزِ تہِ کلمہ پرُن۔ تہ اتھ دوران ییلہِ تم کاشرِ شاعری وون دِنہِ بیٹھۍ۔
منیب: مشینی ضابطہ بندی گٔیوو پوزُے۔ "بظاہر مشینی ضابطہ بندی” تہِ چھا کانہہ چیز؟ مشینی ضابطہ بندی چھیی ظاہری چیز۔ اتھ سیتۍ مزید بظاہر لگاون چھہ بیہ معنی۔ ژکہِ چھہ راہی یس ونن "امچ مشینی ضابطہ بندی باسے یکھ بظاہر تیژ معتبر تہ ورتاوہ کنۍ۔۔۔” یہ چھیہ "بظاہر” لفظچ جملس منز صحیح جاے۔ مگر تہِ کٔرتھ چھہ لفظ بظاہر غیر ضروری۔ اتھ دوران تہِ چھُہ غیر ضروری تکیازِ امہِ برونہہ چھیہ نہ کُنہِ دورانچ کتھ کرنہ آمژ۔ کتھ دوران؟

 راہی: چناچہ تژھہ کینہہ جملہ بازۍ یہ تہِ گے نظرِ۔۔۔‘‘
منیب: لفظ "جملہ بازۍ یہ” جمع ورتاون چھہ غلط۔ صحیح چھہ واحد جملہ بازی۔ یہ گوو غلط گرامر۔
ونن چھس ’چناچہ تژھ جملہ بازی تہِ گے نظرِ۔۔۔‘ 

راہی: تژھہ کینہہ گنگرایہِ تہِ گٔیہِ کنن یمن کاشرِ شاعری نسبت یا تہ ہژرہ باس پریڈان اوس تہ نتہ علم فروشی زامت رچھن ہٲرۍ رویہِ۔
منیب:  "تہ نتہ” کیا گوو۔ "یاتہ” ہس سیتۍ چھہ "نتہ” یوان۔ "تہ نتہ” نہ۔ "تہ” چھہ نہ ییتۍ نس صرف غیر ضروری بلکہ سراسر غلط۔

راہی:  بلکہ چھہ ضرورت گۅڈہ عمومی طور شاعری منز وزنک تصور وارہ ویستارہ سرہ کھرہ کرنک تہ پتہ پننہِ کاشرِ شاعری منز وزنک واقعی صورت حال پرزہ ناونک، پرکھاونک تہ مۅلناونک۔
منیب: لفظ ” گۅڈہ عمومی طور ” چھہ غلط جایہ لگمتۍ ۔ صحیح ترتیب گژھہِ آسنۍ: "بلکہ چھہ ضرورت شاعری منز وزنک تصور گۅڈہ عمومی طور وارہ ویستارہ سرہ کھرہ کرنک۔۔۔”  امہِ علاوہ کاشرِ شاعری سیتۍ لفظ "پننہِ”  لگاونک کیا مطلب چھہ؟ یا تہ ونو  "پننہِ شاعری منز وزنک صورت حال۔۔۔” نتہ ونو  "کاشرِ شاعری منز وزنک صورت حال۔۔۔”  پننہِ چھہ اتہِ نس غیرضروری طور ورتاونہ آمت۔ امہِ علاوہ "واقعی صورت حال” کُس صورت حال گوو؟ صورت حال ونن اوس کافی۔ اگر لفظہ سخاوتے کرنۍ ٲس تیلہ چھہِ مناسب لفظ "صحیح صورت حال”۔ 

راہی: عمومی آیہِ ہیکو وزنہ تلہ مراد سۅ تنظیم نتھ یۅسہ فکری تہ احساسی سرگرمی ہندِ اتھہ واسہ کلام چین مختلف آوازن منز قایم سپدان چھیہ۔
منیب: "مراد سۅ تنظیم”  نہ بلکہ "سۅ تنظیم مراد نتھ” .

راہی:  بعضے چھہ نہ اکۍ سے قومس منز تہِ وزنس متعلق تصور اکی ڈنجہِ روزان۔
منیب: وزنس متعلق تصور نہ بلکہ "وزنک تصور”۔

راہی:  یونانۍ تہ لاطینی زبانن ہنزن شاعری ین ہندۍ تواریخ۔۔۔
منیب:  فارسی، اردو تہ کاشرس منز چھہِ اسۍ شاعری واحد ورتاوان چاہے الگ الگ قومن ہنزِ شاعری ہنز تہِ کتھ آسہِ سپدان۔ اسۍ ونو ’یونانۍ تہ لاطینی زبانن ہنزِ شاعری ہندۍ تواریخ۔۔۔‘‘ انگریزی یس منز چھہ وۅنۍ کینہہ ادیب poetries جمع ورتاونہ لگۍ متۍ ، خاص کر ییلہ تم مختلف قسمہ چہ شاعری ہنز کتھ کرن۔ یہ چھہ سیودے انگریزۍ پیٹھہ ترجمہ۔ سانین زبانن منز چھیہ نہ یہ تبدیلی ونہِ رایج۔ 

راہی:  امہِ چہ معروف شاعری ہند تہِ چھہ اکھ واریاہ بوڈ حصہ وزنہ لحاظہ لکہ شاعری سیتۍ رلان۔
منیب:  "تہِ چھہ” لفظ چھہِ غلط جایہ لگۍ متۍ۔ یمن ہنز جاے چھیہ امہِ جملہ چھلہ پتہ۔ "امہِ چہ معروف شاعری ہند اکھ واریاہ بوڈ حصہ تہِ چھہ وزنہ لحاظہ لکہ شاعری سیتۍ رلان۔”

راہی: تعجب چھہ یہِ زِ تمن چھہ امہِ عروضک تہِ خاصکرتھ مشینی پاسے منہ مون باسان۔
منیب:  یتھ جملس منز چھہ لفظ "تہِ” غیر ضروری۔ بییہِ کمہِ عروضک مشینی پاسہ چھہ تمن منہ مون باسان؟

راہی:  سٲنۍ شاعری بنہِ صوتی تہ احساسی اعتبارہ محض اکھ ووہرۍ خانک یک آواز ٹھک ٹھک۔
منیب: "محض اکھ ووہرۍ خانک ٹھک ٹھک”  نہ بلکہ "ووہرۍخانک محض اکھ ٹھک ٹھک”۔

راہی: حالانکہ جدید ایرانکۍ کینہہ عالم چھہ نہ البیرونی سندین شواہدن پورہ پاٹھۍ تسلی بخش گنزران۔
منیب: لفظ "جدید” چھہ غلط جایہ۔ یہ گژھہِ آسن یتھہ پاٹھۍ ” حالانکہ ایرانکۍ کینہہ جدید عالم چھہ نہ البیرونی سندین شواہدن پورہ پاٹھۍ تسلی بخش گنزران۔” توہہ آسہِ خیال یم جملہ کیا چھہِ راہی یس پننۍ۔ نہ تژھ وۅمید گژھہِ نہ تھاونۍ۔ یم چھہِ فارسی پیٹھہ سیدِ سیود ، لفظ بہ لفظ ترجمہ۔ فارسی ترکیب گژھہِ یہ آسنۍ یتھ راہی ین ترجمہ آسہِ کورمت: ‘دانشمندان جدید ایرانی’۔ چونکہ ‘جدید’ لفظ چھہ ‘ایرانی’ لفظس برونہہ کنہِ، راہی ین تہِ تھوو ‘جدید’ برونہہ کنہِ یہ سوچنے زِ کاشرس منز کتہِ نس لگہِ صفت۔

تہند کیا خیال چھہ؟