کاشر رسالہ واد (قسط 5) : قاضی غلام محمد

qazi

وادس منز چھپن والین غزلن منز آسہ تمہ وقتہ چہ کینہہ نوِ تہ توانا آوازہ یمو منزہ قاضی غلام محمد، رفیق راز، م ح ظفر تہ شفیع شوق سند ذکر خاص طور ضروری چھہ۔

قاضی غلام محمد سندۍ چھپییہ کل شیہ غزل – زہ شمارہ 1، زہ شمارہ 4 تہ اکھ اکھ شمارہ 6 تہ 8 منز۔ قاضی سند غزل سپد امہ چہ متاثر کن تازگی کنۍ سیٹھا مقبول، مگر کم گو آسنہ کنۍ ہیوک نہ یہ غزل پورہ پاٹھۍ شعری منظرنامس منز کاڈ کڈتھ۔

قاضی سندِ غزلچ تازگی چھیہ امہ کین شعرن ہنزِ طلسمی حیرت انگیزی علاوہ ویدۍ تہ عام مضمون ژیتس منز درن واجنین دلکش/غیر معمولی بصری صرژن ہندِ ورتاوہ کنۍ۔ امۍ سندۍ غزل چھہِ عصری حقیقت نش دور (شاید فرار کٔرتھ) پننس پانس منز اکھ طلسمی، حیرت آمیز (سہ حیرت یتھ منز خوفہ بدلہ احترام تہ کرامٲژ ہند جذبہ آسہِ)، خوبصورت تہ وفا شعار دنیا آباد کران۔ شاعر چھہ تخیل کہ قوتہ سیتۍ امکاناتن ہنزہ تژھہ صورژہ تخلیق کران یم ظاہری دنیاہس سیتۍ مماثلت تھٲوتھ تہِ تمہ نیبر باسان چھیہ۔ دویمین لفظن منز ونو ز قاضی سندین شعرن ہنز سیٹنگ چھیہ حقیقی منظرن بجایہ خوابن ہنزہ صورژہ باسان۔

بنمین شعرہ مثالن منز چھہ گۅڈنیک شعر قاضی سنزِ شاعری ہنز کونز۔

بقول شہناز رشید قاضی سنز شعرہ سۅمبرن چھیہ "صورت خانہ” ناوہ چھپیمژ یتھ منز الہ پلہ غزل 25 مرہ چھہِ۔

اچھ وٹتھ بیہہ یہ اوند تہ پوکھ مشراو
صورژن ہند نگار خانہ سجاو
میون دل رنگہ موت چھہ معصوم شُر
چانۍ یاداوری چھیہ سبز الاو
خاصہ جامن کزلۍ ونن تس گٔے
تاپھ کیا کرنہِ میون کُٹھ ژایاو

تتھہ پاٹھۍ ژہ پیہم راتھ ژیتس
زن کاوہ قمیر ژول بونیو تلۍ
پوت ژھایہ کزلۍ اچھ ٲنہ بدن
تمہ بازرہ ہیمہا کیا کیا ملۍ

درایکھ میہ نش تہ ٲنہ لبن دہہہ ہیوتن وۅتھن
آیکھ میہ نش تہ دٲن تھرین تل گنداں چھہِ خواب

میہ تھوو ٲنہ لبن منز سہ ساتھ مٲنتھر دتھ
دپیوتھ بییہ تہِ گژھیا زانہہ یہ دستیاب وۅلو

وادس منز گلریز رسالس متعلق اکھ لۅکٹ بحث

واد رسالس منز چھہ گلریز رسالس متعلق اکھ لۅکٹ بحث سپدمت، یمیک ذکر ضروری چھہ۔ عزیز حاجنی یس چھہ پروفیسر محی الدین حاجنی ین وونمت زِ "گلریز” رسالہ اوس تمی کوڈمت تہ پانس سیتۍ ٲسن مرزا عارف تہ امین کامل تھاوۍ متۍ۔ امہ کہ بند گژھنک وجہ اوس یمن دۅن درمیان نفہکۍ پونسہ باگراونک جھگڑہ، یتھ پروفیسر حاجنی ین فیصلہ کٔرتھ دژاو مگر یمو دریو مون نہ۔ یم کتھہ چھیہ عزیز حاجنی ین شیرازس منز چھپیمتس پننس اکس مضمونس منز ونہِ مژہ۔ تمیک اقتباس چھہ:

” گلریز رسالہ چھپییوو کاشرِ زبانۍ منز یہنزوے (مطلب پروفیسر محی الدین حاجنی سنزو) کوششو سیتۍ تہ توتام رود یہ باقاعدہ پاٹھۍ چھپان یوت تام یم (مطلب پروفیسر محی الدین حاجنی) اتھ سیتۍ وابستہ رودۍ۔ ۔۔ یہ رسالہ چلاونس منز ٲسۍ یمن مرزا غلام حسن بیگ عارف تہ امین کامل تہِ سیتۍ ۔۔۔ یہ رسالہ بند گژھنک اصلی وجہ اوس سہ فتنہ یُس کامل صابس تہ عارف صابس نفہک پونسہ بٲگراونس پیٹھ ووتھ۔ تہ یہ فتنہ انزراونہ خاطرہ دژاو میہ (مطلب پروفیسر محی الدین حاجنی) عاقلی فیصلہ زِ گلریز کہ آمدنی ہندۍ ہریمانہ پٲنسہ گژھن محض امہ رسالہ چہ ترقی خاطرہ تھاونہ ینۍ۔” (شیرازہ جنوری فروری 1988)

اتھ پیٹھ سوز کاملن وادس اکھ خط یس واد شمارہ 12 کس دویمس حصس منز چھپیوو۔ اتھ منز ٲسۍ کاملن حاجنی سند یہ بیان غلط ثابت کرنہ خاطرہ یم حقایق پیش کرۍ متۍ:

(1)  گلریزک گۅڈنیک شمارہ دراو نومبر 1952 ہس منز۔ اتھ چھہ بانی مرزا عارف تہ ترتیب امین کامل تہ پرنٹرپبلشر
محمد صدیق کبروی ٹاکارہ پاٹھۍ چھپتھ۔
(2) فروری 1953 ہس اندر ییلہ کامل امہ ادارہ نش الگ سپد (کامل آو ژکہ سبکدوش کرنہ)، مرزا عارفن بناوۍ محی الدین حاجنی تہ عبدالحق برق کامل سنزِ جایہ ترتیب کار۔
(3) اگر یہ رسالہ محی الدین حاجنی یُن اوس تہ امۍ مرزا عارف تہ امین کامل پانس سیتۍ رٹۍ متۍ ٲسۍ تم کتھہ پاٹھۍ ٲسۍ رسالک نفع بٲگران تہ محی الدین حاجنی اوسکھ فیصلہ دوان کٔرتھ۔

اوت تام اوس صحیح زِ عزیز حاجنی ین لیوکھ تہِ یہ تمۍ محی الدین حاجنی یس نش بوز، مگر کامل سند جواب پٔرتھ پزِ ہے تس اکس ادیب سندۍ پاٹھۍ یمن کتھن متعلق تحقیق کرُن، نزِ واپسی جوابس منز یہ لیکھن: "(کامل) چھہ کافی ادبی سفر طے کرنہ باوجود تہِ اپرِ کس حدس تام جبلت خود نمایی ہند شکار۔ یمہ کتھہ ونہِ میہ حاجنی صٲبن مگر کامل صٲب چھہِ دپان زِ یہ چھہ سراسر اپُز! خیر زبان درازی گوو نہ جان۔”

جبلت خود نمایی ہند کس نہ چھہ شکار؟ مگر گلریز رسالہ کین متعلقہ شمارن ہندۍ گۅڈہ ورق چھہ پیش تاکہ محی الدین حاجنی سنز غلط بیانی گژھہِ ننۍ تہ عزیز حاجنی یس گژھہِ احساس ز یژھہ کتھہ چھیہ نہ جذباتن بلکہ تحقیقک تقاضہ کران۔

gul1

یہ چھہ گۅڈنیک شمارہ، یتھ مرزا عارف بانی لیکھتھ چھہ، محی الدین حاجنی سند چھہ نہ کانہہ ناو نشانے، نہ اداریہس منز تہ نہ مندرجاتن منز۔

gul 2

یہ چھہ پٍنژم شمارہ۔ کامل دراو تریمہ شمارہ پتہ، مرزا عارفن رٹۍ محی الدین حاجنی تہ
عبدالحق برق پانس سیتۍ۔

Gul 3

تمہ پتہ 1955 ہس منز بند گژھتھ، آو 1961 منز دوبارہ کڈنہ، مرزا عارفن رٹۍ غلام نبی خیال تہ مرزا حبیب الحسن پانس سیتۍ۔

عزیز حاجنی صابا، وونۍ ما اوس گلریز رسالہ محی الدین حاجنی ین کوڈمت؟

کاشر رسالہ واد (قسط 4 )

وادکۍ اداریہ چھہ گواہ زِ  1980 اندۍ پکھۍ یۅس پُے ادبس کن آے، تمن نش ٲسۍ واریاہ سوال، پتمیو پُیو ہندِ کھوتہ زیادہ سوال، مگر سوالے ٲتۍ۔ تم ہیکۍ نہ سوالو برونہہ پٔکتھ۔ تمو کرۍ صرف سوال، تمو ژھٲنڈۍ نہ تمن ہندۍ جواب۔ پرانین پُین نش یتھی تتھی سہی ٲسۍ جواب۔ سوال اگر کمے ٲسۍ مگر جوابن ہنز تشفی تہِ ٲسکھ حاصل۔ واد کین اداریہن منز ٲسۍ زیادہ تر سوال تہ صرف سوال کرنہ یوان۔

گۅڈنکس شمارس منز آو وننہ زِ ادیب چھہ سماجک ساروے کھوتہ زیادہ حساس انگ، مگر یس "زنا بالجبر” اسہِ سیتۍ سپدان چھہ تمچ گواہی چھہ نہ سون کانہہ ادیب دوان تکیازِ تمن بچارن نہ چھہ کُنہ سماجی ڈھانچک کانہہ تارپود پتہ تہ نہ چھکھ انسان نوِ سرہ سرنک تہ گرنک کانہہ ولولہ۔ مزید چھہ یہ وننہ آمت زِ "ادب چھہ اکہ سماجچ اندرونی خود آگہی، تہ کانہہ نفر ہیکہِ نہ توت تام ادیب بٔنتھ یوت تام نہ تسند پنن شعور بالغ آسہِ۔ یوت تام نہ سہ انسانی حالژ سنیومت آسہِ تہ امہ سیتۍ حیران تہ پریشان گومت آسہِ۔ یوت تام نہ سہ کُنہِ تبدیلی تہ شاید بہتری ہند طلب گار آسہِ۔ ادیبس گژھہِ انسان سندین وجودی تہ ماورایی کھرین ہند زبردست احساس آسن۔ یمنے کھرین ہنز ورگہ وۅکھنے چھیہ ادیب سنز کٲم مگر یہ وۅکھنے گژھہِ تمہ اندازہ کرنہ ینۍ یُتھ زن یمن کھرین ہند شعور پرن والین تہِ شدت سان سپدِ تہ شاید یم کھرۍ کاسنک کانہہ جذبہ تہِ وۅتلہِ تہندین دلن اندر۔”

دویمس شمارس منز چھہ امہ سماجی شعور پتہ تاریخی شعورچ کتھ تُلنہ آمژ تہ یہ وننہ آمت زِ جمٲژ یا فرد  ہیکہِ نہ تاریخ زاننہ ورٲے پننۍ ذاتھ پہچٲنتھ،  پنن وجود رژھرٲوتھ تہ ارتقا پرٲوتھ۔ سارنے متن تہ تہذیبن اتھ معاملس منز پتھ زٲنتھ چھہ وننہ آمت زِ اسلام کہ ابتدایی عروجک اکھ بوڈ وجہ چھہ اسلامک زبردست تہ سرون تاریخی شعور تہ سیتی چھہ یہ تہِ وننہ آمت ز مارکسس  اوس تاریخک شدید ترین احساس تہ کانہہ تہِ بامقصد ہمکال دانشور ہیکہِ نہ مارکسس نظرانداز کٔرتھ۔

تریمس شمارس منز چھہ زبانۍ ہند شعور چکاونہ آمت۔ زبانۍ ہند تنقیدی شعور چھہ انسانی علوم تہ تاریخ زاننہ خاطرہ اہم قرار دنہ آمت۔ وننہ چھہ آمت زِ سماجک  با رعایت تہ با اثر طبقہ چھہ پننۍ زبان اصل تہ معیاری زبان ویندنک کچل بہہ مون کران تہ پننین مفادن قومی حیثیت بخشان۔ لہذا چھیہ زبانۍ ہنز حد بندیہ پھٹراونچ سفارش کرنہ آمژ۔

ژورم شمارہ چھہ شاعری متعلق سوالہ ہا پرژھان زِ شاعری کُس چیز چھہ شاعری بناوان؟ کیا شاعری پرکھاونۍ چھا ممکن؟ شاعری چھہِ کٲتیاہ پہلو۔ ہیتی، فنی، موضوعاتی، اسلوبیاتی، نظریاتی تہ جمالیاتی پہلو۔ سوال چھہ کرنہ آمت زِ یمو منزہ کس پہلو چھہ شاعری، شاعری بناوان؟

پٍنژمس شمارس منز چھہ "آتش چنار” کہ حوالہ پرژھنہ آمت ییلہ شیخ عبداللہ 1975 منز دِلہِ الحاق کٔرتھ آو تہ ریاستس منز 1953 ہچ قانونی حیثیت بحال کرنک وعدہ کرنہ آو، کاشر یس 53 ہس منز سکولن منز اوس تراونہ آمت، کیازِ آو مشراونہ؟ ہندی تہ اردو کیازِ سپدۍ اسہِ پیٹھ مسلط؟

شیمس شمارس منز چھیہ پرن والین ہنزِ متواتر شکایژ جواب دنچ کوشش کرنہ آمژ ز واد چھہ اکثر غیر شایستہ لفظ ورتاوان یس غیر صحت مند چھہ۔ ادارہ چھہ صحت مند صحافتس کھوکھرۍ مفروضہ تہ نظریاتی بلف ؤنتھ رد کران۔ وننہ چھہ آمت زِ زبان شایستہ تہ غیر شایستہ زمرن منز بٲگراونۍ چھہ نہ کانہہ لسانی اصول۔

ستمس شمارس منز چھہِ افسانس متعلق تقریبا تمے سوال پرژھنہ آمتۍ یم شاعری پیٹھ ژورمس شمارس منز پرزھنہ آمتۍ ٲسۍ۔ افسانہ کتھ ونو؟ یہ پرکھاون چھا ممکن؟ اکھ خاص کتھ  چھیہ یہ وننہ آمژ  زِ شاعری منز چھہ نہ کال نظرِ گژھان۔ شاعری ہند وق چھہ روحانی ییلہ زن افسانہ فزیکل وقتک پابند چھہ۔

ٲٹھمس شمارس منز چھہ وننہ آمت زِ کانہہ تہِ چیز مۅلونہ خاطرہ چھیہ اکھ کہوٹ آسنۍ لازمی۔ یم معیار چھہِ نہ کالہ پگاہ بنان بلکہ چھہِ زیٹھہِ انسانی تجربکۍ پیداوار۔ کہوچن ہند تعلق چھہ کُنہِ جمٲژ یا فردہ سندس نظریہ حیاتس سیتۍ۔ اکہ سیتۍ ییہِ بیاکھ پہچاننہ۔ سوال چھہ پرژھنہ آمت زِ اکہ زمانہ چہ کہوچہ ہیکنا بییس زمانس منز لگہ ہار ٲستھ؟ اگر اسۍ حقیقت ہمیشہ بدلونۍ مانون، کہوچہ تہِ بدلن۔ اگر نہ، تیلہِ روزن معیار پریتھ زمانس منز لگہ ہار۔ وننہ چھہ آمت ز از چھیہ نہ اسہِ پرانین کہوچن پیٹھ پژھ روزمژ مگر نوِ کہوچہ تہِ چھہِ نہ بنٲوتھ ہیکان۔

نوۍ مس شمارس چھہِ زہ حصہ۔ اکھ حصہ چھہ مہجور سنزِ صد سالہ برسی پیٹھ اکاڈمی ہندس سیمنارس متعلق۔ اتھ سیمنارس منز شامل کینژن کھۅکھرین دانشورن ہندِ بہانہ چھہ وننہ آمت زِ "سون ناخواندہ دانشور طبقہ چھہ ہونین ہندِ کھوتہ بدتر۔ ہونس گژھہِ اڈج ٹکنہ باپتھ آسنۍ پتہ چھیس نہ کھسنۍ۔” دویمس حصس منز چھہِ ونان زِ سانہِ شاعری ہند بوڈ حصہ چھہ صوفی شاعری یمۍ لکہ شاعری ہند لب لہجہ ورتوو۔ مگر سیتی چھہ وننہ آمت ز "لکہ شاعری (چھہ نہ)  پنن کانہہ لب و لہجہ۔” امہ علاوہ چھیہ عروضس تہ کاشرن لین متعلق تمے کتھہ پننہِ فہمہ موجب وننہ آمژہ یم امین کاملن مہجور سیمنارس منز پننس مقالس منز ونہِ مژہ آسہ۔ کامل چھہ خطس منز لیکھان ” مہجورنس ہتۍ مس وہروادس پیٹھ پور میہ اکھ مقالہ۔ کٲنسہ شاعرس عروضی بنیٲز  پیٹھ سام ہینچ ٲس یہ گۅڈنچ کوشش۔ اتھ اندر اوس اکھ کاشر لیہ نظام ترتیب دنک تجویز پیش کرنہ آمت۔  دۅشوے کتھہ (چھو) حوالہ ورٲے کھتاوِ مژہ۔”

دہمس شمارس منز چھیہ کشیرِ ہندس اعتقادی ارتقاہس مختصر سام ہینہ آمژ۔ بدھ مت کتھہ پاٹھۍ آو ختم کرنہ۔ تمہ پتہ کتھہ پاٹھۍ پھانپھلیوو شیومت یمیک مشہور فلسفی ابھنو گپت اوس۔ وننہ چھہ آمت ” شیو متک مانن چھہ زِ کاینات چھہ آفاقی ژیتہ شکتی ہند ظہور۔ یہے شکتی چھیہ پریتھ رنگس منز جلوہ گر تہ یمۍ انسانن یہ ژیتر پروو، سہ پراوِ نجاتھ۔” امہ پتہ چھہ اسلام یوان یمہ پتہ کشیرِ واریاہ سیاسی، سماجی تہ تاریخی گٲیلہ گے تہ نتیجہ دراو زِ کشیرِ ہنز فلسفیانہ روایت مۅیہ۔ مگر یمو عظیم روایتو چھہ سانین لکہ روایژن پیٹھ سرون اثر تروومت۔ لل دیدِ پیٹھ شیومت تہ شیخ العالمس پیٹھ اسلامک تہ شیو تہ بودھ متک تہِ اثر چھہِ ٹاکارہ۔ صوفی شاعری پیٹھ تہِ چھہ یمن عظیم روایژن ہند اثر نون تہ ٹاکارہ۔ سوال چھہ پرژھنہ آمت زِ موجودہ دورچہ کاشرِ شاعری منز تہِ چھا یمہ روایژ درینٹھۍ گژھان کنہ نہ؟

کہمس شمارس منز چھہ وننہ آمت ” کانہہ تہِ قوم چھہ نہ مذہب کس بنیادس پیٹھ پھبتھ ہیوکمت۔ بدیشی مذہب چھہ نہ قومن ہنز تہذیبی ساخت تہ جبلی عمل بدلٲوتھ ہیکان یعنی مذہبی تبدیلی چھیہ نہ تہذیبی تبدیلی بٔنتھ ہیکان۔ بدیشی مذہب چھہ اکی تہذیب تہ تمدن کین مختلف طبقن منز بینیر پیدہ کٔرتھ یمن پانوانۍ ژوناوان تہ فسادات کرناوان۔ کاشر چھہ پننہِ تہذیب تہ تمدن کنۍ اکھ قوم تہ کاشر س چھیہ پننۍ اکھ تہذیبی تہ تمدنی شناخت تہ مذہبی تہ سیاسی گٲیلو کنۍ گے کاشرۍ سنز تہذیبی شناخت مسخ تہ کاشر آو طبقن تہ ورگن منز بٲگرنہ۔ طبقن تہ ورگن ہنز زبان گیہ بیون۔ ” ٲخرس پیٹھ چھہ تجویز پیش کرنہ آمت "کاشرِ تہذیبی وحدتچ بازیافت چھیہ تیلی ممکن ییلہ زن اسۍ ساری اکھ اکۍ سندین معاملاتن منز شریک سپدو۔”

بہم شمارہ چھہ فلسفہ چکاوان۔ ونان چھہِ  زِ انسانی روحک یس روایتی تصور اسہِ نش چھہ سہ چھہ یہ زِ "روح چھہ اکھ لافانی شے، یتھ پیٹھ نہ وقتک کانہہ اثر چھہ۔ یۅہے روح پرزناونک تلقین چھہِ سانۍ صوفی شاعر کران، مگر زبان چھیہ اکھ تاریخی شے، لہذا اگر اسۍ انسانی شخصیتک یہ تصور پاننٲوتھ کُنہِ فن پارس سام ہیمو تہ کتھہ پاٹھۍ؟ ادبی تنقیدس منز چھیہ تاریخ مخالف نہجہِ سیٹھا سرنۍ مول۔ آفاقی ادب تہ آفاقی جمالیات ہوۍ تصور چھہِ امی نہجہ ہندۍ پیداوار۔ اسہِ پییہ پننین تنقیدی پرمانن نوِ سرہ سام ہینۍ۔ یہ کتھ چھیہ لازمی ز ادب مۅلونہ برونہہ گژھہِ یہ کتھ واضح آسنۍ زِ انسانس متعلق کیا چھہ سون تصور۔” امہ شمارہ کس دویمس حصس منز چھہ مہجور صد سالہ سیمنارس متعلق وننہ آمت زِ مہجور سندس فنس پیٹھ کتھ کرنہ برونہہ پزِ سرہ کرن تسند نظریہ کیا چھہ اوسمت؟ نظریچ اہمیت تہ کارکردگی کیا چھیہ ادبس منز؟ مہجور سندس جمالیاتس، بوطیقا، لسانی اہمیژ پیٹھ چھہِ سوال ہا کٔرتھ وننہ آمت زِ یمن مسلن پیٹھ آو نہ اکاڈمی ہندس سیمنارس منز کانہہ مقالہ پرنہ۔ "سیمنارس منز آو فقط درامن کرنہ۔”

تروٲہم شمارہ چھہ ادبچ تہ تنقیدچ فرق یتھہ پاٹھۍ سمجاوان تہ کاشرس تنقیدس متعلق حکم دوان "ادب یودوے زن کانہہ ادراکی علم چھہ نہ تہ یودوے زن اتھ عقلہِ تہ منظقس سیتۍ زیادہ واٹھ چھہ نہ مگر ادبی تنقید چھہ اکھ منطقی تہ ادراکی علم۔ ادبس متعلق مختلف سوالن نظریاتی سۅتھرس پیٹھ جواب ژھارنس منز چھہِ اسۍ عقلی تہ منطقی دلیلن کٲم ہیوان تہ تنقید بامعنی تہ با مقصد بناونہ باپتھ چھہ لازمی زِ تنقید نگارس گژھہِ عقلی تہ منطقی صلاحیژو واش آسن کوڈمت۔ تمۍ سندۍ تجربات تہ مشاہدات گژھن کافی وسیع آسنۍ تہ تس گژھہِ علمک تہِ اتھہ روٹ آسن۔ بییہ گژھہِ تس انسانی لاشعور سمجنچ صلاحیت آسنۍ۔ بدقسمتی چھیہ یہ زِ ییلہ اسۍ کاشرس ادبی تنقیدس سام چھہِ ہیوان، اسہِ چھہ نہ یُتھ کانہہ تنقید نگار درینٹھۍ گژھان۔”

ژۅدٲہمس شمارس منز چھیہ ساہتیہ اکاڈمی تہ ریاستی کلچرل اکاڈمی تنقیدک ہدف بناونہ آمژہ۔ ساہتیہ اکاڈمی متعلق چھہ وننہ آمت "کاشرس منز یمہ تہِ کتابہ ساہتیہ اکاڈمی ہندِ طرفہ شایع سپزہ، ترجمہ یا تخلیق رنگۍ، (تم) چھیہ حیرانگی ہندس حدس تام زبانۍ رنگۍ غلط تہ موادہ رنگۍ ناموزون۔ ساہتیہ اکاڈمی چھیہ کاشرِ تہذیب تہ تمدنچ بیخ کڈنہ باپتھ زبردست کوشش کران۔ منافق تہ ناہنجار لوکن ہنزہ کتابہ شایع کٔرتھ چھیہ اکاڈمی کاشرکۍ مول پراٹان۔ وننہ چھہ یوان زِ ساہتیہ اکاڈمی منز چھیہ ژونٹھۍ پیٹہِ، ماچھ بوتلہ، شال تہ ڈونۍ زبردست پاٹھۍ چلان تہ ‘ڈونۍ ادبس’ چھہ پوچھر یوان دنہ۔ ساہتیہ اکاڈمی منز چھہِ وۅنۍ کاشرِ زبانۍ ہنز نمایندگی ریاستی کلچرل اکاڈمی ہندۍ ملازم کران تہ کاشرین کتابن یم جہالت پھیلاوان چھیہ، چھہِ انعامہ دنہ یوان۔” ریاستی کلچرل اکاڈمی متعلق چھہِ ونان ” اکاڈمی یہ کینژھا ادبی مجلسہ، ادبی محفلہ تہ سیمنار کرناونس منز کران چھیہ، سہ چھہ حوصلہ بخش مگر یمہ کتابہ تہ رسالہ اکاڈمی ہندِ طرفہ شایع سپدان چھہِ، تم چھہِ مویوس کن۔ اکاڈمی چھیہ کاشر ڈکشنری شایع کرمژ، ڈکشنری سیتۍ وابستہ ادیبن ہنزِ علمیتک اندازہ چھہ ڈکشنری پٔرتھ سپدان۔ ڈکشنری سیتۍ وابستہ لوکھ چھہِ ناخواندہ تہ جاہل۔ یمن نہ چھہ کاشر صرف و نحو معلوم تہ نہ چھہ یمن ڈکشنری ترتیب دنچ صلاحیت موجود۔” یہ اوس دراصل ڈکشنری پیٹھ میانین مضمونن ہند زور یمو منزہ اکھ اتھۍ ژۅداہمس شمارس منز چھپیوو۔

کاشر رسالہ واد (قسط 3 )

پٍنژمس شمارس منز چھہ اختر محی الدین سند بیاکھ مضمون "راج ترنگنی تہ کاشر زبان” چھپان۔ جایہ ناون متعلق امۍ سند امہ برونہم مضمون ییتہِ تحقیق تہ حقایق پیش کرنچ کوشش کران اوس، یتھ مضمونس منز چھیہ زیادہ پہن تخیلی فطانتس کٲم ہینہ آمژ۔ اتھ منز چھہ سہ کینہہ مثالہ دتھ یہ نتیجہ کڈان زِ کاشر زبان چھیہ سیٹھا قدیم تہ امکۍ واریاہ لفظ چھہِ سنسکرت زبانۍ منز شامل گژھتھ سنسکرت شبدہ کوشکۍ حصہ بنیمتۍ۔ مگر اتھ حقیقتس واقف نہ آسنہ کنۍ چھیہ عام طور یمن لفظن ہنز سنسکرت شکل مقدم ماننہ آمژ۔ شاد رمضان چھہ اتھ مضمونس متعلق لیکھان "اختر محی الدین صٲبن مضمون چھہ واقعی فکرانگیز تہ قابل توجہ۔ (یم چھہِ) گۅڈنچہ لٹہِ سون ظۅن کینژن اہم کتھن کن پھران یمہ سیتۍ کاشرِ زبانۍ ہند پرانیر تہ زبانۍ ہندس خاندانی رشتس متعلق اکھ سونچن تراے برونہہ کن یوان چھیہ۔”

نٔوۍ مس شمارس منز چھہ اختر محی الدین سند بیاکھ اکھ مضمون "اند” لفظس متعلق۔ اتھ منز چھہ سہ امہِ لفظہ چہ مختلف صرفی شکلہ دوان، یمن منز "منز” ہوۍ لفظ اتھ عجیب لغت نویسی دلچسپ بناوان چھہِ۔ "منز” لفظس منز چھہ تسندۍ کنۍ نکارۍ برونہہ لوگ /م/۔ باقی بچن وول حصہ /انز/ چھہ تسندۍ کنۍ /اند/ لفظہ چی بیاکھ شکل یۅس انزس منزس، منزیم، منزُل، انزُل تہ دلوانزُل ہوین لفظن اندر یوان چھیہ۔ اختر محی الدین چھہ اتھ نتیجس پیٹھ یمن لفظن ہندِ معنی کہ ہشرہ (؟) کنۍ واتان۔ امہ مضمون کہ تعلقہ چھہ کامل "کلامس دزیوم معافی” عنوانس تحت یمن نتیجن ہندس گرامر کین صرفی اصولن مطابق نہ آسنس کن اشارہ کران۔

ژۅداہمس شمارس منز چھپوو اقبال فہیمن میون اکھ13 ہن صفحن ہند مضمون "کاشر ڈکشنری تہ لفظن ہندۍ مول” ۔ یہ اوس تمن مضمونن ہندِ سلسلک اکھ حصہ یس میہ ڈکشنری ہندین مختلف پہلوون پیٹھ لیوکھمت اوس۔ اتھ مضمونس منز اوس میہ ہوومت زِ کاشرِ ڈکشنری منز چھہِ لفظن ہندۍ مول یاتہ غلط دنہ آمتۍ نتہ یہ لفظ چھہ تہ تی۔ میانہِ خیالہ اگر امہ غیر ضروری معلومات بدلہ لفظن ہند جنس دنہ آسہِ ہے آمت، سہ روزِہے ڈکشنری ورتاون والین ہندِ خاطرہ مفید۔ بیاکھ مضمون یس لفظن ہندس معنی یس سیتۍ تعلق اوس تھاوان اوس شیرازس دنہ آمت۔ اقبالن اوس میٲنس مضمونس اداریہس منز یمو لفظو سیتۍ بوش کھولمت:

mun

"منیب الرحمن صٲبن چھہ کاشرِ ڈکشنری ہندس پوت منظرس منز کاشرِ زبانۍ ہندین اہم لسانی تہ غیر لسانی مسلن پیٹھ مضمونن ہند اکھ سلسلہ تیار کورمت۔ تسنز یہ کٲم چھیہ ونکینس زیر کتابت تہ جلدے ییہ کتابہِ ہندس صورتس منز برونہہ کن۔ امی سلسلہ منزہ چھن اسۍ تسند اکھ مضمون یتھ شمارس منز شایع کران۔ اتھ مضمونس منز ییتہ منیب الرحمن نن لفظن ہندۍ مول ژھارنہ کین مختلف طریقن ہنز ویژھنے کرمژ چھیہ، تتہِ چھہِ تمۍ ڈکشنری منز دنہ آمتین لفظن ہندۍ مول غلط قرار دتۍ متۍ۔ تمن پیٹھ چھہ تمۍ سیٹھا مدلل بحث کورمت۔ اتھ مضمونس سیتۍ تعلق تھاون والین تہ ڈکشنری پروجیکٹس سیتۍ وابستہ زبان دانن ہندِ خاطرہ چھہ یہ اکھ زبردست چلینج۔ ذمہ داری تہ دیانت داری چھیہ یی ونان زِ اتھ پیٹھ گژھہِ نہ صرف ردعملک اظہار بلکہ اکھ بھرپور بحث سپدن۔”

__________

واد رود متواتر کتابن پیٹھ تبصرہ تہِ شایع کران، یم سیٹھا دلچسپ آسان ٲسۍ۔ زیادہ پہن تبصرہ اوس اقبال فہیم پانہ کران۔ باقی تبصرہ چھہِ م ح ظفر، رفیق راز، شفیع شوق، تہ کٲنسہِ کٲنسہِ کرۍ متۍ۔ حالس چھہ روتل (ہری کرشن کول)، بیہ سۅکھ روح (سنتوش)، آواز دوست (غلام رسول نازکی)، ژکرہ ویوہ (ہردے کول بھارتی)، پن تہ پاپ (غلام نبی گوہر) تہ تحقیق (غلام نبی آتش) چھیہ کینہہ کتابہ یمن ہندۍ تبصر ہ وادس منز چھپییہ۔ تقریبا چھہ سٲری تبصرہ منفی تہ یمن تبصرن منز ٲسۍ اقبال فہیمنۍ تبصرہ زیادہ بے رحم آسان۔ تہندیو تبصرو منزہ کینہہ مثالہ:

"انشاییہس تہ افسانس منز کیا چھیہ بنیادی فرق یہ ہیکہِ نہ ڈاکٹر زمان آزردہ صٲبس فکرِ تٔرتھ۔ اردو تہ انگریزی انشاییہس مقابلہ چھہ آزردہ صٲبن انشایی مجموعہ شرۍگی تہ فاترازی۔ انشایہ کس ناوس پیٹھ فاترازی کرنۍ چھیہ شرمناک تہ قابل افسوس۔ فاترازی ترجمہ کرناونۍ گیہ بیاکھ فاترازی۔ فاترازی انعامہ ترنۍ گیہ انعامہ دیاون والین ہنز دماغی تہ شعوری صلاحیژن وُنہ وسنۍ۔ یژھن کتابن گژھہِ پابندی لاگنہ ینۍ تکیازِ یم کتابہ چھیہ لوکن ان پڑھ بناونس منز اتھہ روٹ کران۔”

"نادمنۍ کلہم شاعری چھیہ کلام موزون۔ امیک سبب چھہ یہ زِ سٲرسے عمرِ رود نادم نظریاتی منافق تہ خود غرض۔ نادم چھہ ژکہِ شاعر تہ امۍ سنز شاعری (اگر اتھ شاعری ونو) چھیہ اکہ درجہ حرارتچ شاعری۔ یی چھہ فراقس تہ راہی یس گومت۔ یہنز شاعری تہِ چھیہ زیادہ کھوتہ زیادہ کلام موزون۔ راہی یس چھہ نہ کانہہ واضح لب و لہجہ۔ یہ چھہ پننۍ کنۍ خیال نظماوُن یژھان مگر یم وۅپر خیال چھہِ امس ژھمب کٔرتھ گژھان تہ یہ چھہ مۅمننُن ہیوان۔”

تبصرن منز اوس صرف شفیع شوق اعتدالس کٲم ہیوان۔

کاشر رسالہ واد (قسط 2 )

وادک زو دار حصہ اوس امکۍ خط۔ یم ٲسۍ نہ ژھوژۍ – رسالہ کہ گیٹ اپکۍ تعریف یا ادارہ کہ کاشرِ زبانۍ ہند ژکۍ در آسنکۍ تعریف، بلکہ اوس یمن منز بحث و مباحثہ، کھلہ اعتراض تہ گرفت تہ سوال جواب۔ یمن خطن ہندۍ محرک ٲسۍ اکثر امکۍ کھرۍ دار اداریہ نتہ کنٹروورشل مضمون تہ تبصرہ۔ بعضے تخلیقاتن پیٹھ پرن والین ہنز راے یمن منز شفیع شوق اہم تہ مثبت رول ادا کران رود۔ خط لیکھن والۍ ٲسۍ نہ لفظو دادِ چۅرتہ۔ کانہہ خط اوس نہ اکہ کالمہ کم تکیازِ کتھے آسہ تژھہ۔ میہ چھہ نہ باسان کاشرِ ادبک کانہہ رسالہ کیا ہیکہِ اتھ معاملس منز وادس مقابلہ کٔرتھ۔ پریتھ پرن وول اوس رسالہ رٹۍ تھے امکۍ خط گۅڈہ پران، پتہ اداریہ تہ باقی چیز۔ کینزن خطن منز آیہ ذاتیات تہِ چکاونہ۔

امہِ رسالچ بڈ کمزوری ٲس یہ زِ یہ ہیوک نہ ادبس منز کانہہ نہج پیدہ کٔرتھ، امۍ چکاوۍ سوال، سوالن ہندۍ حل نہ۔ امۍ تل شور مگر وتہ ہاوک بنیوو نہ۔ شاید اوس نہ امیک سہ مقصد تہِ۔ اتھ رسالس منز چھپن والۍ حضرات ٲسۍ اداریہن تہ تبصرن ہندِ منفی رویچ تہ قابل اعتراض زبانۍ ہنز اکثر شکایت کران۔

fahim
اقبال فہیم، واد رسالک روح رواں

رسالہ کس تریمس شمارس منز چھپیوو غلام رسول سنتوش سند مضمون” کشیر تہ کاشرِ زبانۍ متعلق اکھ سونچن تراے”۔ یہ اوس دراصل اختر محی الدین سندِ مضمون کس ردعملسے منز لیکھنہ آمت، مگر براہ راست نہ۔ سنتوش چھہ تمہیدس منز لیکھان ” میہ ٲس راے بہ لیکھہ براہ راست کشیرِ ہنزن جایہ ناون متعلق، مگر کینہہ بنیادی مشکل مدنظر تھٲوتھ زون میہ مناسب زِ بہ کرہ گۅڈہ ہارِ پربت تہ ینترس متعلق ہنا زان۔” شنتوش اوس انتہایی ذہین ادیب۔ یہ ذہانت ٲس اتھ مضمونس منز تہِ ننۍ۔ یہ اوس سہ بٹہ فلسفہ یتھ سنتوش دھیانہ تہ گیانہ سنیوومت اوس تہ یتھ پیٹھ تسنزِ مصوری ہنز تہِ بنیاد ٲس۔ سنتوش سند یہ مضمون آو نہ پرن والین سمجھ کینژھا امہ کس فلسفس سیتۍ نا آشنایی کنۍ، کینژھا امہ چہ ہندی آمیز زبانۍ کنۍ تہ کینژھا تمہ کرتب بازی کنۍ یمہ سیتۍ سہ "کاو” لفظس دُبہ پھرِتھ "واک” تہ پرانہ شکتی ہندۍ ہٲ، ٲ، سٲ تہ شٲ اکی کۅمبہ ہندۍ زٲنتھ "شول” لفظس "حول” بناوان چھہ۔ امہِ مضمونک ہرتر اوس زِ کاشرِ زبانۍ تہ ناون ہنز روایت زاننہ خاطرہ چھہ بٹہ ریژن تہ رواجن سنن ضروری تکیازِ یمن منز چھہ پریتھ کتھہِ ہند جواب موجود۔

سنتوش سند بیاکھ مضمون چھپیوو شیمس شمارس منز یتھ منز تمۍ تمن سوالن ہند جواب دنچ کوشش ٲس کرمژ یم ژورمہ شمارہ کس اداریہس منز اقبال فہیمن تلۍ متۍ ٲسۍ۔ اقبال اوس فنی، موضوعاتی، نظریاتی، اسلوبیاتی تہ جمالیاتی پہلوون ہنز کتھ تُلتھ یہ پرژھان زِ شاعری کُس چیز چھہ شاعری بناوان۔ یودوے سنتوش سندس مضمونس منز سیٹھا اہم تہ دلچسپ کتھہ وننہ آسہ آمژ، تسند تحریر اوس بییہ اکہ لٹہِ اکس مخصوص لفظہ ووترس سیتۍ سیتۍ غیر مانوس تصوراتن ہند ورتاو کران۔ دراصل اوس یہ سنتوش سند طرز تحریر بنیوومت۔ سہ اوس امچ سفارش سیٹھا زورہ شورہ کران۔ چناچہ چھپیوو نٔومس شمارس منز سنتوش سند اکھ خط یتھ عنوان اوس دتھ "کاشرس منز چھہ نہ صحیح تہ صحت مند روپ وۅتلان”۔ اتھ منز اوس باقی کتھن علاوہ یہ وننہ آمت زِ کاشر زبان چھیہ ژکہِ بٹہ ریتہ رسمن ہنز زبان تہ اگر کانسہِ شخژن یہ زبان تہ امیک لفظہ بھنڈار امہ خدشہ ووتوو زِ یہ گوژھ نہ راوُن، سہ پزِ نہ مارن۔ اگر نہ سنسکرت تہ ہندی آمیز کاشرس قبولیت دمو بٹہ کتھہ پاٹھۍ مازن کاشرس۔

امین کامل چھہ بہمس شمارس منز اقبال فہیمس، سنتوشس، اختر محی الدینس تہ شفیع شوقس "کلامس دزیوم معافی” مضمونس منز خبر ہیوان۔ کامل چھہ سنتوش نہِ سفارشہ یہ ؤنتھ رد کران زِ اسہِ گژھہِ سنسکرت تہ فارسی دۅشونی لفظہ بھنڈارن پیٹھ ناز آسن۔ یتھہ پاٹھۍ اسہِ سنسکرت لفظہ بھنڈار پنن کاشر باسان چھہ ، فارسی لفظہ بھنڈار تہِ گژھہِ پنن کاشر باسن۔ کامل سند مدعا اوس نوین سماجی تہ تہذیبی حالاتن پیش نظر منساونہ آمتۍ لفظ چھہ نہ دوبارہ زندہ کرنہ یوان۔ کشیرِ ہندۍ مسلمان بننا دوبارہ پنڈت زِ تم کرن سنسکرت کاشر بولن تہ لیکھن شروع۔

تروٲہمس شمارس منز چھپییہ رتن لال شانت سنز اکھ چٹھۍ یتھ منز تمۍ کامل سندس اتھ تبصرس پیٹھ اعتراض کورمت اوس یہ ؤنتھ زِ کاملس چھہ یہ بہت زِ سنسکرت بنیاد رژھرنۍ گٔے بٔٹل رژھرنۍ تہ فارسی مسلمانی۔ شانتن کور کامل سندس نیتس پیٹھ شک۔ یمہ کنۍ کاملس جوابا چھہ عرض کتابہِ منز اتھ معاملس پیٹھ اکھ مفصل مضمون لیکھن پیوو۔ غرض یہ زِ واد رسالس سیتۍ رود گۅڈنکہِ شمارہ پیٹھے اکہ نتہ بییہ رنگۍ بٹہ مسلمان بحث جاری۔ کیاہ ٲس پتاہ زِ عنقریب ییہ سہ دوہ ییلہ کشیرِ ہندس تواریخس امہ رنگۍ اکھ بوڈ ولگتن لگہِ۔!

کاشر رسالہ واد (قسط 1)

Image

گوڈہ "نیب” تہ پتہ "کاشر ادب”  رسالہ بند گژھنہ کنۍ یُس ژھریر کاشرس ادبی ماحولس منز پیدہ گومت اوس، خاص کر نوجوان ادیبن تہ پرن والین ہندِ خاطرہ، سہ ژھریر کور کنہِ حدس تام "واد” رسالن دور۔ گۅڈنکہ شمارہ کہ اداریہک گۅڈنیکے جملہ چھہ یتھہ پاٹھۍ شروع گژھان "ژھۅپہِ ہندس یتھ عالمس منز چھہِ وننکۍ تہ بوزنکۍ تمام ہاوس باسان وٹسۍ گامتۍ۔ مگر توتہِ چھہ بعضے انسان پھٹنس یتھ باکہ یژھان دین۔” واد رسالک گوڈنیک شمارہ دراو 1985 منز تہ امہ کس ادارتس منز ٲسۍ اقبال فہیم، م ح ظفر تہ نذیر جہانگیر۔ کینژِ کالۍ رود پتہ اقبال تہ ظفر اتھ سیتۍ تہ زیادہ پہن پوٚتس اقبالے۔ یہ رسالہ رود 1991 تام ؤری یس منز دۅیہ لٹہِ چھپان۔ امہ پتہ رود نہ میہ کشیرِ سیتۍ زیادہ تعلق لہذا چھیم نہ خبر 14 شمارہ پتہ کٲتیا بییہ شمارہ درایہ اتھ رسالس ونیک تام۔

امہ رسالہ کہ ذریعہ سپدۍ واریاہ نوجوان ادیب متعارف  تہ باقین تہِ میول چھپنک موقعہ، یمن منز خاص کر پانہ رسالک ادارہ، اقبال فہیم، م ح ظفر، نذیر جہانگر،  قاضی غلام محمد، رفیق راز، شفیع شوق، شاد رمضان، عزیز حاجنی، فیاض تلگامی، غلام احمد آجر، جی ایم آزاد، مشتاق مہدی، ثنا اللہ میر بیترِ  شامل چھہِ۔ رسالس منز رودۍ پرانہِ پییہ ہندۍ ادیب تہِ منزۍ منزۍ چھپان یمن منز چمن لال چمن، مظفر عازم، رتن لال شانت، ہری کرشن کول،  ہردے کول بھارتی، غلام احمد گاش، بشیر اختر، اوتار کرشن رہبر، غلام رسول سنتوش، امین کامل، اختر محی الدین، حامدی کاشیمری تہ رحمن راہی شامل چھہِ۔ یتھ رسالس منز ییتیاہ نوۍ تہ پرانۍ ادیب چھپان روزن تتھ چھہ پانے وقار حاصل گژھان۔ اقبال فہیمنۍ یا ونو ادارکۍ کھرۍلد اداریہ تہ تبصرو باوجود گوو یہ رسالہ سیٹھا مقبول۔

واد رسالہ کین یاد گار چیز ن منز چھہِ قاضی غلام محمد، رفیق راز تہ م ح ظفر سندۍ غزل تہ شفیع شوق سندۍ مضمون شامل۔

 گۅڈنکۍ سے شمارس منز چھپییہ امین کامل سنز نظم "تٲے نامہ”۔  یہ نظم بنییہ ریاستس منز  تمہ غیر اطمینانی تہ بیزاری  ہند پیش خیمہ یمیک نتیجہ کانسہ ہندس خیال وخوابس منز تہِ اوس نہ۔ نہ اوس کانسہِ یہ خیال زِ کامل ییہ یژھ ہش بے باک نظم ہیتھ برونہہ کن۔ امہ نظمہِ تہ امہ پتہ امہ قبیل چہ یم نظمہ  کاملن لیچھہ، نوۍ کیو ، بزرگ شاعر  لگۍ تمن ہنز پیروی کرنہِ تکیازِ امہ قسمہ چہ نظمہ  آسہ  وۅنۍ حسب حال۔ واد کس دویمس شمارس منز چھہ اکھ ذہین نوجوان جی ایم آزاد اتھ متعلق لیکھان ” گۅڈنکس شمارس منز یس چیز میہ ساروے کھوتہ زیادہ پسند آو سہ چھہ کامل صٲبن ‘تٲے نامہ’۔ یہ نظم چھیہ کاشرین ہنز مکمل داستان حیات۔ میہ سپز یہ نظم پٔرتھ پانس تہ پننین ہموطنن سیتۍ نفرت تہِ پیدہ تہ ہمدردی تہِ۔” شفع شوق چھہ تریمس شمارس منز اکھ نظمہ متعلق لیکھان "امین کاملنۍ طنزی نظم  ‘تٲے نامہ’ چھیہ اکھ یاد گار نظم آسنہ علاوہ زندگی سرنچ اکھ اہم کوشش۔”

Image

[امین کاملن چھہِ حاشیس منز نظمہ ہندۍ تم بند درج کرۍ متۍ یم واد والیو چھپاوۍ متۍ ٲسۍ نہ۔]

دویمس شمارس منز دراو اختر محی الدین سند اکھ سیٹھہے اہم مضمون یس راج ترنگنی منز کشیرِ ہنزن جایہ ناون ہنزِ غلط نشاندہی متعلق اوس۔ سہ چھہ لیکھان ” کشیرِ ہندین گامہ ناون یہ کھرۍ کانگر اننچ کٲم چھیہ میانۍ کنۍ تمہ دۅہہ شروع سپزمژ ییمہِ دۅہہ اسہِ راج ترنگنی کشیرِ ہنز گۅڈہ کالچ تواریخ ماننک غلط فیصلہ کور۔” مضمون اوس سیٹھا دلچسپ تہ امۍ تل اکھ زبردست بحث۔ وادسے منز چھپییہ اتھ متعلق زہ خط۔ ڈاکٹر ترلوکی ناتھ سند خط اوس اختر محی الدین سندین سوالن جواب کم تہ جذباتی زیادہ، مگر بشیر اختر سند خط اوس اختر محی الدین سندین نتیجن سیتۍ کینہہ دلچسپ حوالہ دتھ اختلاف کران۔ مگر اختر محی الدینن دیت ستمس شمارس منز بشیر اختر سندین اعتراضن اختر بنام اختر خطس منز اکہ اکہ پرُن لایق جواب۔ کشیرِ چھا دراوڈ بسیمتۍ؟ اختر محی الدین تہ محمد یوسف ٹینگ چھہ یہ دعوی کران۔ یمن خطن منز آو یہ تہِ زیر بحث۔ از چھہ نہ یہ کانہہ مسلے۔ کشیرِ ہندین کینژن علاقن منز چھہ ڈی این اے ٹیسٹ کرُن، سورے اول وانگن نیرِ زِ کاشرین منز کہند کہند خون چھہ۔  

دویمس شمارس منزے چھپیوو ہری کرشن کول سنزِ ‘حالس چھہ روتل’ افسانہ سۅمبرنہِ پیٹھ رفیق راز سند تبصرہ یتھ منز تمی یہ بھارتی تہ رہبرس مقابلہ کمتر افسانہ نگار قرار دیت۔ راز سند بنیادی اعتراض اوس زِ کول سندۍ زیادہ تر افسانہ چھہِ ہنگامی نوعیتکۍ تہ بٹن ہندین مسلن تہ اکس محدود جغرافیاہس منز بند۔ امۍ تل بیاکھ بحث، اتھ متعلق آو خطن منز اختر محی الدین تہ شفع شوق سند رد عملہ علاوہ خود ہری کرشن کولن سند حوابی مضمون۔ کول سند جواب اوس مفصل تہ وایاہن اہم کتھن پھٹ کڈان مگر ژکھہِ ہوت۔ وادس منز آیہ واریاہن خطن منز ادبس تہ ادبی بحثن منز بٹل تہ مسلمانی ورتاونک الزام اکھ اکس پیٹھ لگاونہ۔ یمہ بحثک اکھ کونہ اوس اور کن تہِ اشارہ کران۔