گزر ژورِ ہند استعارہ

GUZAR

شہل تہ شوژ چھہ کاشر غزل وناں عازم
ویو تہِ نے تہ گُذر ژورِ ما انتھ ہیکہِ مال

(نیب شمارہ اول اکتوبر 1968)

 

یہ چھہ مظفر عازم سند اکھ مشہور شعر، یمیک چرچہ میٲنس لۅکچارس منز واریاہس کالس رود۔ اتھ منز یۅس کتھ وننہ ٲس آمژ سۅ  ٲس یتھہ کنۍ تہِ دلچسپ خاص کر تتھ وقتس منز ییلہ کاشرِ شاعری منز نویرہ رنگۍ واریاہ کینہہ لیکھنہ اوس یوان تہ نوۍ نوۍ تجربہ کرنہ رنگۍ مختلف ماخذن فایدہ تلنہ اوس یوان۔ مگر امچ دلچسپی ٲس امہِ کس انداز بیانس منز تہِ ۔ یہ استعارہ اوس شاعری ہندِ خاطرہ نو٘و تہ اتھ دورس منز ٲسۍ شاعر پننہ پننہ مقدورہ تہ مزاجہ مطابق  نوۍ نوۍ استعارہ ورتاونچ کوشش کران۔

وچھو ہے تہ اتھ منز چھہِ زہ بیان۔ اکھ  یہ دعوی زِ عازم چھہ شہل تہ شوژ کاشر غزل ونان۔ یہ دعوی چھہ یہندِ غزلہ چہ زبانۍ تہ استعارن ہندس حدس تام واریاہ صحیح۔ یہ اوس تمہ وقتہ تہِ صحیح ییلہ یہ شعر وننہ اوس آمت تہ از تہِ چھہ۔ حرف ڈاے چھیہ امچ گواہی دوان۔ زبانۍ ہندِ رنگہ شوژ کاشر غزل ونن والین شاعرن منز ہیکون اسۍ عازم سرس تھٲوتھ۔ یہ چھہ ساروے کھوتہ شوژ کاشِر زبان ورتاوان۔ میہ باسان یس غزل زبانۍ ہندِ رنگہ شوژ آسہِ، سہ آسہ شہل تہِ۔

دو٘یم بیان چھہ گزر ژورِ ہند۔ مال انن چھہ نہ گناہ مگر یہ مال گژھہِ جایز طریقہ اننہ یُن۔ اگر الیٹ سند قول نظرِ تل تھاوون (حالانکہ الیٹن تہِ چھہ یہ قول بیۍ سے ژورِ نِتھ ورتومت) جایز طریقہ چھہ نقل کرنہ بجایہ ژورِ انن۔ مگر گزر ژورِ ہند استعارہ چھہ اسہِ ونان زِ مال تارنہ خاطرہ چھہ اتھ ٹیکسہ ہن دنۍ ضروری۔ یہ ٹیکس چھہ شاعر نقل کرنہ بجایہ اتھ پننہ زبانۍ تہ روایتس ہم آہنگ بناوان۔ یہ چھہ اتھ کاشراوان۔

مظفر عازم چھہ پننہ شاعری منز اتھ اصولس سختی سان پابند باسان۔ امہ علاوہ چھہِ یم شعرن منز کتھ اشارن منز وننک قایل۔ یمہ ساتہ یم شعرہ نیبر کانہہ کتھ نثرس منز تہِ ونن اشارنے منز ونن یمہ کنی یہ سمجن کنہ ساعتہ مشکل گژھان چھہ زِ تم چھا الف ونان کنہ بے۔

دو٘یمہ بیانک بیاکھ دلچسپ نکتہ چھہ شود تہ شوژ مال نہ ویُن۔ اتھ منز چھہ طنزتہِ تہ پیراڈاکس تہِ ۔ امہ کین معنوی پہلوون چھہِ اسۍ سٲری بخوبی واقف۔

 

 

مظفر عازم صابنی یم لفظ تھاووکھ ییتہ نس بطور یاداشت محفوظ:

گۅڈہ گۅڈہ یم میٲنۍ اردو شعر اذان رسالس منز یا اورہ یور چھپے، تم تۯاوتکھ الگٕے۔ گۆڈنیک کٲشر غزل چھپیو کۅنگہ پوش رسالس منز۔ دلیل بنییہ، جرنلسٹ مقبول حسین اوس مے یار۔ (شاید آسہ ہے 1954\1955) ۔ مقبول حسینن وۆن یہ دمو کۅنگہ پوش کس اڈیٹر، فراق صٲبس۔ بہ اوسس ازۍکی پٲٹھۍ تیلہ تہ مندچھہ بتھ ۔ مقبولن نیونس پانس ستۍ فراق صٲبن گرہ، غزل پۆرم تمس نشہ، تمۍ کۆر پسند تہ چھپیوو۔ یہ وۆنمے امہ کنۍ زہ سہ غزل چھم نہ کنہ اتھہ یوان، مگر اکھ شعر تمہ منزہ یتھ فراقن داد دژوو سہ اوس اتھۍ ژٲنگس زُتنۍ ہاوان: لٹِس اکھ گاشہ لٕے آسٕم پننۍ وتھ پانہ پۯزلٲوم یتُے وۆن زُتۍنہ وولن تارکن ہند بوش اسمانن (مے اوس لیوکھمت تارکن ہند تاو، فراق صٲبن دۆپ بوش لیکھوس، یُتے چھم یاد)۔

بیہ سریہہ مقام

osh

کانہہ تہِ شعر پٔرتھ چھہ ذہنس منز سوال وۅتھنۍ لازمی تہ سوال وۅتھنۍ چھہ جان چیز۔ اگر نہ سوال ووتھ ، یا تہ آسہِ شعر معمولی نتہ آسہِ تمیک مضمون، یا آسن تمکۍ پیکر تہ استعارہ، نتہ آسن تمکۍ الفاظ  تہ زبان ویدۍ۔ اکثر شعر پٔرتھ چھہ نہ میٲنس دلس تہ دماغس کٕتہ کٕتہ تہِ گژھان، مگر کانہہ کانہہ شعر چھہ تھپھ تراوان تہ سوچنس پیٹھ مجبور کران۔ یموے منزہ چھہ شہناز سند یہ شعر :

کۅ پاٹھۍ پیوکھ ژیتس یتھ بیہ سریہہ مقامس پیٹھ
زہ ژور قطرہ اچھن منز میہ ٲسۍ رٲوۍ تمے

یہ شعر چھہ اکس نازک  مقامس یا معاملس کن اشارہ کران۔ امہ کتھہِ ہند چھہ شعرس سننہ برونہے احساس گژھان۔  کۅپاٹھۍ لفظہ سیتۍ چھہ ظاہر زِ امہ شعرک مخاطب یاد پیون چھہ نہ کانہہ خوشگوار واقعہ۔ کۅپاٹھۍ گوو زبردست پاٹھۍ، ژرۍ پاٹھۍ، ولٹہ پاٹھۍ، کنہِ چارہ روس۔ یعنی یاد پینک یہ تجربہ دراو  تکلیف دہ۔ کیازِ؟  امیک جواب چھہ امہ پتے ینہ واجنہِ ترکیبہِ منز۔ "بیہ سریہہ مقام”۔ مقام چھہ  جاے تہِ تہ سفرک یا زندگی ہند کانہہ مرحلہ تہِ۔ سریہہ آسن گوو ماے محبت، لول۔ سۅ جاے تہ سہ مرحلہ یُس ریگستانکۍ پاٹھۍ خشک آسہِ۔ یتھ نہ کانہہ سریہہ آسہِ، یس سریہہ کہ خاطرہ کریشان آسہِ۔ یتھ منز نہ محبت آسہِ بلکہ شاید تمچ کمی یا تمیک ضد، نفرت۔  بیہ سریہہ مقام ترکیب چھیہ مختلف استعاراتی معنین ہنز متحمل۔ بیہ سریہہ مقام چھہ جایہ ہند  تہ وقتک استعارہ تہِ بنان۔ کٲنسہِ ہند یاد پیون، یُس شاید جدا آسہِ گومت،  یا یس سراسر لول اوس، چھہ لازما انسانہ سنزہ اچھ ادراوان۔ کٲنسہِ ہندس یادس منز اوش ہارُن تہ تمہ سیتۍ وقتہ کس کریشونس ریگستانس کانہہ فرق نہ پینۍ بلکہ پننۍ اشۍ  قطرے راوراونۍ  چھہ امہ شعرہ کس واقعس تکلیف دہ بناوان تہ امیک مضمون تہِ مشخص کران۔

زہ ژور قطرہ اچھن منز آسنۍ چھہ یہ اشارہ تہِ کران زِ اوش ہارۍ ہارۍ چھیہ اچھ گۅڈے خشک گمژہ۔ یتھ کتھہِ کن تہِ اشارہ زِ یاد پینہ وٲلس نش یوتاہ ماے محبت تہ سریہہ اوس، تتھ سیتۍ ہمسری چھیہ نہ ممکن۔ یا تہ گژھہِ تیوت سریہہ تہ اوش اچھن منز آسن زِ یہ وقتک صحراو گژھہِ سیراب نتہ راون یم قطرہ تہِ یم کینژن شخصن (مثلا متکلم) سنزن اچھن منز  موجود چھہِ۔ صحراو چھہ تیتھے یتھ اوس، انزہ منزہ اگر روو کینہہ تہ یم پننی اشۍ قطرہ، یم خبر کنہِ مشکل گرِ منز ما یہن پانہ سے بکار۔ انسان چھہ نہ صرف نیبرمس دنیاہس بلکہ پننس پانس تہِ لول وندان۔ کینہہ قطرہ چھہِ پننہ خاطرہ تہِ رژھراونۍ یپوان۔

شعرس منز کتھ چیزس دمو مرکزی اہمیت، کٲنسہِ ہندس یاد پینس، بیہ سریہہ مقامس، کٲنسہِ ہندس اشکۍ قطرہ راورنس؟ معنیچ قطعیت چھیہ سوالن ہند سلسلہ بند کران۔

کُس گوو توت

th_Charari Shareif

کُس گوو توت تہ کمیو ڈیوٹھے
توت نتھ وٲتتھ کیتۍ گیہ پتھ
یمۍ یوت پنن پانا ژیوٹھے
تمۍ تیژ لٔبے لیٹھے وتھ

شیخ العالم

شیخہ شروکین پیٹھ کتھ کران چھہ سٲری پشہ پیٹھہ زن شین والان۔ یہ چھہ یمن تیوت سہل تہ برونہہ کنیک معاملہ باسان زِ کُنہ لفظس پیٹھ غور کرنہ خاطرہ چھہِ نہ کٲنسہ ہندۍ قدم رکان۔

تور کُس ووت تہ سہ کمۍ وچھ۔ یہ چھہ اتھ پیٹھہ کنیک معنی۔ توت یعنی تور، تتھ جایہ، تتھ طرفس۔ مگر توت گوو تتُن تہِ، تیزُن تہِ، سخت گرم گژھن تہِ۔ توت فقیر، توت موت! یہ معنی ہیکون نہ نظر انداز کٔرتھ۔ توت گژھن گوو بخار کھسُن تہِ۔ امہ لحاظہ کٔرو دویمس مصرعس پیٹھ غور۔ "کیتۍ گیہ پتھ”۔ پتھ گژھن گوو بیمار سنز حالت خراب گژھنۍ، ابتر گژھنۍ۔ پتھ گژھن گوو وتی ڈۅکن تہِ۔ منزلس نہ واتن۔ ہمت ہارنۍ۔

ڈینٹھن گوو نظرِ یُن، اچھن منز یُن۔ کمیو ڈیونٹھے؟ کس آو سہ بوزنہ؟ آفتابہ ہیکیا کانہہ وچھتھ؟ آفتاب ہیکیا کانسہِ اچھن منز یِتھ؟ آفتاب کس تژرس ہیکہِ کانہہ توتے ژٲلتھ۔ تریمس مصرعس منز چھیہ پان ژیٹنچ کتھ۔ پان ژیٹن گوو پننس پانس ژنجہِ دنہِ، پنن سینہ دگن، مار دین۔ پان کُس ژیٹہِ ؟ سے یُس تتیومت آسہِ ، یُس سیٹھا تیزیومت آسہِ۔ یُس پان ژیٹہِ سہ تتہِ، یُس تتیومت آسہِ سہ ژیٹہِ پان۔ پان ژیٹن گوو نہ پان ژٹن۔ یہ چھیہ نہ محنتچ یا ریاضتچ کتھ۔ یہ چھیہ پنن پان گالنچ کتھ۔ پنن پان، پنن نفس یوتاہ گالنہ، مارنہ ییہِ، تیوتاہ ژھۅٹہِ وتھ۔ ژھوٹ وتھ تتھ خاص مقامس تام۔

زیٹھ وتھ آسنہ کنۍ تہِ ہیکہِ کانہہ پتھ گژھتھ۔

Die unto Me so I can live in thee! — Jesus

شیخ العالم چھہ اکھ ا کھ لفظ تولۍ تولۍ ورتاوان تتھہ پاٹھۍ زن یم لفظ امی بنٲومتۍ چھہِ۔

اتھ شروکس منز چھہ /ت/ آوازِ ہند سیٹھا غلبہ، مخولہ چھہ نہ، ژۅن مصرعن منز چھہ 13 / ت/ ذات الہی کہ آفتابک تژر تہ تیزر باوان۔

کُنیرے بوزکھ

shk

کُنیرے بوزکھ کُنہِ نو روزکھ
امۍ کنرن کوتاہ دیت جلاو
عقل تہ فکر تور کوت سوزکھ
کمۍ مالہِ چیتھ ہیوک سہ دریاو

شیخ العالم

کُنیر گوو توحید۔ خدایہ سنز ذات چھیہ لاشریک۔ کُنۍ۔ بوزُن گوو کنہِ چیزس کن تھاون۔ کنہِ چیزس کن دھیان دین۔ کانہہ چیز سمجھن تہ زانن۔ بوزن گوو حساب لگاون تہِ۔ روزُن گوو کنہِ جایہ ٹھہرن، قرار کرن۔ "کُنیرے بوزکھ” چھہ شرطیہ فقرہ۔ اکھ فرض کرنہ آمت صورت حال۔ اگر تہِ سپدِ، اگر خدایہ سنز ذات سمجھنۍ ہیکھ، زاننچ کوشش کرکھ، کنہِ روزکھ نہ۔ کنہِ نہ روزن گوو وحشت طاری گژھن تہ کنہِ جایہ نہ قرار لبُن۔ بیاکھ معنی گوس پنن آسُنے راوُن۔ جلاو دین گوو نپہ نپہ کرن، چمکن۔ نون نیرُن۔ یعنی امہ کنرہ منزہ کوتاہ، لانہایت دراو نون۔ عقل چھیہ انسان سنز زان حاصل کرنچ صلاحیت یمچ بنیاد پانژن حیسن پیٹھ چھیہ تہ فکر چھیہ امہ صلاحتچ عمل۔ "توت کوت سوزکھ” گوو عقلہ ہند توت نہ واتن، رسایی نہ حاصل گژھنۍ۔ وتی ژھۅکن۔ تریم مصرعک عقل واتہِ نہ توت تام چھہ دۅشونی کتھن پیٹھ لاگو۔ عقل ہییکہِ نہ کنرس تام وٲتتھ تہ توت تام تہِ نہ یہ امۍ کنرن بود چھہ کورمت، لانہایت جلاو۔ لفظ "تور ” چھہ قابل غور۔ تور کوت سوزکھ یعنی کانہہ وسیلہ چھہ نہ تہ بییہ چھیہ نہ سۅ کانہہ مخصوص جاے یوت کانہہ چیز سوزنہ ییہِ۔ بوزکھ لفظہ کہ تعلقہ ونو زِ کنرس حساب لگاون چھہ ناممکن۔ اسۍ ہیکو نہ امہ کس جلاوس تہِ حساب لٲگتھ۔ خدا (توحید) سمجھن تہ زانن چھہ نہ انسانہ سندِ خاطرہ ممکن۔ ٲخری مصرعہ چھہ اتھ مابعدالطبیاتی خیالس اکہ مثالہِ سیتۍ محبتہ سان (مالہِ) سمجھاونچ کوشش کران۔ یہ چھہ ضرب المثل۔ دریاو چینک چھہ نہ سوالے۔ پیٹھہ کُس دریاو؟ "سہ دریاو” یُس سانہِ دریاوہ تہِ زیادے دریاو چھہ تکیازِ دریاو چھہ لگارتار، ژھینہ روس، ہمیشہ وسوُن۔ یُس چیۍ چیۍ تہِ ختم گژھہِ نہ ۔ سہ روزِ تتۍ تیتھے۔ سہ چھہ یہ دپۍ زِ تہِ ازلی ابدی۔

یہ شروک چھہ توحید وجودی یس کن اشارہ۔ یمہ مطابق خدایہ سندِ مفرد ذاتہ تہ وجودہ ورٲے بییہ کانہہ/کینہہ موجود چھہ نہ۔

کُنرس وون میہ خدایہ سنز ذات، اسۍ ہیکو اتھ صرف کُنیر تہِ ؤنتھ یا ونوس "کینہہ نہ”۔

اتھ شروکس منز چھہ /ک/ آوازِ ہند تکرار۔ گۅڈنکین دۅن مصرعن منز چھہ/ن/ آوازِ ہند تہِ تکرار یُس قابل توجہ چھہ۔ یم زہ آوازہ رٔلتھ چھہ لفظ "کُن” تہِ بنان۔ یم آوازہ چھیہ کُنرہ چہ تہِ کلیدی آوازہ۔

گاہ چون پیوان گٹہِ

candle

گاہ چون پیوان گٹہِ
اکہِ لٹہِ ییہم نا

ییلہ میانۍ موج گذرییہ، تس ٲسۍ میہ ژور ؤری وچھنس گمتۍ۔ پننہ تسلی خاطرہ اوسس بہ واریاہس کالس چۅرتہ گژھتھ پریتھ رٲژ نیت کران زِ بہ وچھن سۅ خوابس منز۔ مگر صبحس اوسس سیٹھا مایوس گژھتھ وۅتھان۔ اتھ دوران ٲس میانۍ جذباتی حالت ناقابل بیان۔ صرف آم حبہ خاتونہِ ہند یہ شعر بکار یس یمن دۅہن میٲنس دلس تہ ذہنس پیٹھ اوس یوت تام میہ موج خوابۍ آیہ۔ یتھۍ ہوۍ شعر چھہِ میہ اکس ہمعصر عربی شاعر سنزِ اکہِ نظمہِ ہنزہ یم زہ لٲنہ یاد پاوان۔

والجُمَل القصيرة
أجمل وسيلة لعبور المحيطات

تہ ژھوٹۍ جملہ چھہِ
سدرس تارہ ترنکۍ بہترین وسیلہ

یہ ٲٹھن (8) لفظن ہند شعر چھہ کاشرِ زبانۍ ہند ژھوٹہِ کھوتہ ژھوٹ شعر تہ اتھ منز چھیہ سۅ قوت زِ امۍ تورس بہ اتھ مشکل وقتس منز بیہ زبان جذباتن ہندس سدرس تارہ۔ یہ شعر اوس امہ برونہہ تہِ امہ چہ غنایژ کنۍ زیوِ کھوتمت، مگر یہ ہیکہِ یتھس کنہِ موقعس پیٹھ میہ یتھہ پاٹھۍ بکار یتھ، امیک اوسم نہ کانہہ اندازہ۔ ییلہ ییلہ کانہہ شعر پرنہ یوان چھہ چاہے سہ ہتہ بود ؤری پرون آسہِ، تمچ تخلیقی عمل چھیہ پرن وٲلس منز منتقل گژھتھ زو لبان۔ بلکہ ونہ بہ یہ کتھ یتھہ پاٹھۍ زِ تخلیقی عمل چھیہ شعر سپدنہ برونہہ، دوران تہ پتہ تہِ جاری روزان۔ تخلیقی عمل چھیہ ہمیشہ موجود تہ حاضر۔ کہنی چھہ نہ پرون۔

غنایت چھیہ انسان سندس کنرس جلوہ ریز کران۔ یمہ شعرچ غنایت چھیہ امہ چہ فارمہ (ہیتک) اکھ اٹوٹ حصہ۔ وژنک اکھ اکھ لفظ چھہ موسیقی ہنزن تارن زیر دوان۔ وچھو امہ شعرچ صوتی تفصیل۔

[گٹہِ] تہ [لٹہِ] چھہِ اتھ شعرس منز تیتۍ ننۍ زِ قافیہ چھہ امہ چہ ٲڈرنہِ ہند مرکز باسان۔ بلکہ چھہ یمن سیتۍ بیاکھ لفظ [اکہِ] تہِ قافیہ رنگۍ رلان۔ امہ علاوہ چھہِ [گٹہِ] تہ [گاہ] تہِ آوازہ ہشرہ کنۍ قافیہ چی اکھ صورت۔ قافیہ علاوہ چھیہ نون غنایی آواز تہِ ترییہ لٹہِ [چون، پیوان، نا] لفظن منز ورتاونہ آمژ۔ /ی/ آواز تہِ چھیہ [یوان] تہ [ییہم] لفظن منز مشترک۔ /او/، /آ/، /ای/ تہ /آ/ ژور زیٹھۍ مصوتہ تہِ چھہِ امی ترتیبہ شعرس منز ژھۅٹین مصوتن مقابلہ چھکرتھ۔ امہ علاوہ چھہ /ہ/ آوازِ ہند تکرار تہِ [گاہ] تہ [ییہم] لفظن منز موجود۔

لسانی پہلو تہِ چھہ دلچسپ۔ شاعر چھہِ گرامر کین اصولن ہنز خلاف ورزی اکثر کران۔ صحیح فقرہ چھہ [چون گاہ] مگر شعرس منز چھہ پھر تھُر [گاہ چون] بناونہ آمت شاید لفظ "گاہ” سیتۍ شعر شروع کرنہ خاطرہ تاکہ یہ روزِ زیادہ پہن نظرن تل۔ ژۅن لفظن ہندس اتھ مصرعس منز چھہ امدادی فعل [چھہ] حذف کرنہ آمت یمہ کنۍ [پیوان] لفظ نون چھہ درامت۔ دویمس مصرعس منز چھیہ گرامرچ سۅ حالت ورتاونہ آمژ یتھ منز سوال تہِ چھہ، تمنا تہِ چھیہ تہ حسرت تہِ۔

جایہ سیتۍ چھہ وقت تہ وقتہ سیتۍ چھیہ جاے۔ یمن دۅشونی ہندس اتھس منز چھہ انسان مجبور۔ گۅڈنکس مصرعس منز چھہ جایہ ہند متعلق فعل [گٹہِ] دورِرک تہ دویمس منز وقتک متعلق فعل [اکہ لٹہِ] چھونرک احساس وۅتلاوان۔ شاعرس چھہ معلوم زِ جایہ ہنزِ علیحدگی منز ہیکہ صرف گاہ پیتھ تہ وقتہ کس یک جہتی بہاوس منز چھہ اکی لٹہِ یُن گژھن ممکن۔

یہ شعر چھہ نہ صرف موسیقی تہ لسانی ورتاو بلکہ گۅڈنکۍ سے مصرعس منز اکھ استعارہ قایم کران۔ اکھ معمولی شاعر ونہِ ہے "چانی یاد چھیہ یوان” مگر گٹہِ منز گاہ پیون چھہ یاد تہِ، خواب تہِ، کُنیر تہِ، زون تہِ، خلوت تہِ، جلوہ تہِ، بے ثباتی تہِ، وۅمید تہِ غرض سٲری امکانات پانس منز شرپراوان۔ امہ شعرہ کہ گۅڈنکہ مصرعک خیال چھہ زِ گاش چھہ گٹۍ سے منز نون نیران۔ امچ قدر چھیہ انہِ گٹۍ سے منز۔ یمن ہند وجود چھہ اکھ اکۍ سندِ سیتی۔ شعرک کردار چھہ پانس رٲژ سیتۍ (انہِ گٹس) تہ پننس معشوقس زونہِ سیتۍ (گاشس) مشابہت دوان تہ یہ امکان تہِ پیدہ کران زِ انہِ گوٹ چھہ گاشچ کمی تہ یہ کمی چھیہ شعری کردار سندِ خاطرہ ناقابل برداشت۔ یہ خیال چھہ رسول میر سندس یتھ مصرعس منز تہِ:

متہِ میانہِ مہ رۅخسارہ وچھہتھ بہ گٹے لو

ارۍ نہِ رنگ گوم

arni2

ارۍ نہِ رنگ گوم شراون ہی یے
کر یی یے درشن دی یے

یہ چھا محمود گامی سند کِنہ کانسہِ فرضی ارنہِ مالہِ ہند، تتھ بحثس منز گژھنہ ورٲے ونہ بہ زِ یہ شعر چھہ میہ لۅکچارہ پیٹھے پسند۔ اکھ امہ چہ غنایژ کنۍ تہ دویم امہ کہ مضمونہ کنۍ تہ تریم تمہ مضمون کہ استعاراتی بیان کنۍ۔ یم تریہ خوبیہ اکۍ سے شعرس منز امہ شدتہ سان جمع گژھنہِ چھہ نہ عام۔

غنایت

سانۍ کینہہ نقاد چھہِ غنایتس نچہِ نظرِ وچھنہِ لگۍ متۍ۔ غنایت یودوے شاعری ہندِ خاطرہ ضروری چھیہ نہ مگر اتھ چھہ شاعری سیتۍ ہمیشہ پیٹھہ واٹھ رودمت۔ شاعری ہنز شروعاتے چھیہ غنایت (گیون تہ موسیقی) سیتۍ سپزمژ تہ شعرک یۅہے جز جھہ اتھ پیٹھے بانہ عام لوکن (کلچرس) سیتۍ واٹھ دوان۔ اگر شاعری یونیورسٹی ہندین مخصوص شعبن منز مخصوص طالب علمن تامے محدود تھاونۍ چھیہ، تیلہ چھیہ بدل کتھ۔ تیلہ ہیکو اسۍ شاعری کُنہِ تہِ کارس ؤنتھ، یمہ خاطرہ اتھ خاص طبقس تربیت دنہ ییہ۔ شاعری کتھ ونو امیک فیصلہ چھہ نسل در نسل شعری اظہارچہ تمدنی شراکت داری ہندس نتیجس منزے سپدان۔ اتھ منز چھیہ تبدیلی وارہ وارے مول رٹان تہ سۅ تہِ تنقیدی فیصلو بجایہ یمنے شعری اظہارن ہنزِ تبدیلی ہندِ ذریعہ۔

اسۍ تراوو امہ شعرچہ غنایژ پیٹھ اکھ نظر۔ شعرس منز کتھہ پاٹھۍ چھیہ غنایت پیدہ گژھان؟ گۅڈنیکے چیز وزن تہ ہیت (فارم)۔ یۅس شاعری کانہہ مخصوص ہیت ورتاوِ نہ مثلا آزاد نظم/نثری نظم، تمہ چہ غنایژ منز تبدیلی ینۍ چھیہ لازمی کتھ۔ یہ شعر چھہ وژنہ چہ ہیژ منز یتھ منز قافیہ بندی مصرعن ہنز شکل صورت مقرر کران چھیہ۔ وژن چھہ نہ قافیہ بندی ورٲے کہنی۔ اتھ شعرہ ہیژ منز چھہِ نہ صرف اند قافیہ بلکہ اندرونی قافیہ تہِ یسلہ پاٹھۍ ورتاورنہ یوان۔ وزن ورتاونہ واجین شعرہ ہیژن منز چھہ پریتھ مصرعہ تقریبا برابر زیچھرک (وقفہ) آسان۔ دۅن مصرعن ہند یہ برابر وقفی میژ چھہ اکھ نمونہ ترتیب دوان یُس غنایژ ہند اکھ بوڈ جز چھہ۔

غنایت چھیہ امہ علاوہ (مخصوص) آوازن ہندِ تکرارہ سیتۍ تہِ پیدہ گژھان۔

یتھ شعرس منز چھہِ تریہ ہوی قافیہ /ہی یے/، /یی یے/ تہ /دی یے/ ورتاونہ آمتۍ یتھ اسۍ اند قافیہ ونو۔ دۅن مصرعن ہندس اندس پیٹھ امہ قافیہ کس تکرارس چھہ دویمہ مصرعہ کس شروعس منز امیک ہریمانہ تکرار غنایت پیدہ کران خاص کر یہ کتھ ذہنس منز تھٲوتھ زِ اتھ قافیس منز چھہِ زہ زیٹھۍ مصوتہ فی قافیہ یوان /ای/ تہ /اے/۔ نون (9) لفظن ہندس اتھ شعرس منز چھیہ نہ صرف یمن ترین لفظن ہنز قافیہ ترتیب بلکہ چھہِ امہ علاوہ تہِ اندرونی قافیہ ننۍ نیران۔ /شراون/ تہ /درشن/ چھہِ بییہ زہ لفظ یم ہم قافیہ چھہِ۔ گویا نون (9) منز چھہِ پانژھ (5) لفظ قافین پیٹھ مبنی۔ یُتے نہ بییہ دیوس وون۔ بیاکھ اکھ لفظ چھہ قافیہ رنگۍ نون نیران۔ /کر/ یُس درشن لفظہ کس /در/ حصسس سیتۍ ہم قافیہ چھہ۔ یتھہ پاٹھۍ چھہ قافیہ لفظن ہند تعداد نون (9) لفظن ہندس اتھ شعرس منز شین (6) تام واتان۔

سانۍ نقاد چھہِ پننہ شاعری ہنز یہ بنیادی خصوصیت ترٲوتھ کمہِ تام کلاسیکل یونانۍ شعریاتچ برتری چکاوان یۅس زن سیٹھا افسوسس لایق کتھ چھیہ۔ بہ ونہ بییہ اکہ لٹہِ زِ شعرس منز غنایت آسنۍ چھیہ نہ ضروری مگر شعرچ غنایت چھیہ نہ قطعا شاعری ہند ضد۔ میہ کٔر پیٹھہ کنہِ دۅن زیٹھین مصوتن ہنز کتھ۔ اتھ شعرس منز چھہِ نہ اند قافین ہندۍ صرف تم زہ زیٹھۍ مصوتہ بلکہ چھہِ بییہ زہ زیٹھۍ مصوتہ گوم لفظک /او/ تہ شراون لفظک /آ/۔ زیٹھین مصوتن منز چھیہ ٲسچ حالت یلہ آسان یۅس گیونہ خاطرہ سیٹھا اہم چھیہ۔ یوت ٲس یلہ آسہِ تیوت نیرِ آواز نیبر۔ امہ رنگۍ چھیہ نون /ن/ آواز تہِ اہم۔ اتھ آوازِ منز تہِ چھیہ غنایت۔ نون چھہ تتھ شہس پیٹھ بناونہ یوان یُس ٲسہ وتہِ بجایہ نستہِ کنۍ نیبر کڈنہ یوان چھہ۔ نستہ ہنز وتھ چھیہ یلہ حالژ منز آسان۔ لہذا چھیہ نون آواز تہِ گیونس منز مدد کران تہ اہم۔ وچھو اتھ شعرس منز کٲتیا نون چھہِ چھکرتھ۔ ارۍنہِ لفظک /ن/، رنگ لفظک /ن/، شراون لفظک /ن/ تہ درشن لفظک /ن/۔ یمن ژۅن نونن منز ہیکون اسۍ گوم لفظک /م/ تہِ شامل کٔرتھ تکیازِ /م/ آواز تہِ چھیہ نستہِ ہنزِ یلہ حالژ منز بناونہ یوان۔

نون آوازِ پتہ وچھو اسۍ زِ اتھ شعرس منز چھہ /ر/ آوازِ ہند تہِ تکرار۔ ارۍنہِ لفظک /ر/۔ رنگ لفظک /ر/، شراون لفظک /ر/ تہ درشن لفظک /ر/۔ یم پانژھ (5) ریے آوازہ چھیہ ٲسہ منزہ نیبر نیرن وٲلس شہس پیٹھ بناونہ یوان یتھ جزوی ٹھور کرنہ یوان چھہ۔ چھہ تہ یہ مصمتہ مگر امہ مخصوص صفتہ کنۍ چھہ واریاہن زبانن منز مصوتہ چہ جایہ تہِ ورتاونہ یوان۔ نزدیکی مثال چھیہ سنسکرت۔ /ر/ آوازِ ہند یہ تکرار تہِ چھہ امہ شعرچہ غنایژ منز ہریر کران۔ رنگ گوم لفظن ہند صوتی تنافر چھہ اکھ بیاکھ مسلہ یتھ پیٹھ ونۍ کین کتھ ضروری چھیہ نہ، صرف کرہ اکھ اشارہ زِ امہ سیتۍ چھہ یمن دۅن لفظن /رنگ گوم/ پیٹھ زیادہ توجہ سپدان یُس معنوی طور شاید اہم چھہ۔

مضمون تہ استعاراتی اظہار

واضح طور چھہ اتھ شعرس منز دوریر/جدایی ہند مضمون یُس تمام دنیا چہ شاعری منز پتھ وتھ مقبول چھہ رودمت بلکہ چھہ دوریر شاعری ہندین محرکاتن منز تہِ شامل۔ یہ چھہ نہ کانہہ خیالی، تصوراتی یا ذہنی مضمون۔ پرانہِ زمانہ اگر گامہ پیٹھہ شہر کھسن پیوان آسہِ ہے، تتھ منز تہِ آسہِ ہے بٲژن یا عزیزن پچھن ہند دوریر سپدان، تاہم چھیہ نہ کتھے ییلہ سانین جوان زنانن پننین مردن ہندِ خاطرہ وندک وندہ جدایی منز کڈن پیوان آسہِ ہے یوت تام تم پنجابہ پیٹھہ محنت مزورۍ کٔرتھ واپس پھیرہن۔ کوتاہ ظلم اوس اگر کانہہ کانہہ وندہ پتہ ریتہ کالس تہِ گرِ نیبرے ڈۅکان آسہِ ہے تہ کینژن صورژن منز کانسہ کانسہ واپس پھیرنے مشتھ گژھان آسہِ ہے۔ یتھین شعرن منز چھیہ اکہ سماجچ تواریخ اظہار لبان۔ نون اظہار یتھہ پاٹھۍ قدیم چینی شاعری منز مروج اوس اوس نہ کاشرس کلچرس منز ممکن۔ جدایی ہند جسمانی پہلو چھہ یمہ شعرہ کس استعارس منز ٹاکارہ۔ نہ صرف جسمانی پہلو بلکہ چھہ ڈلونہِ وقتک تہِ حوالہ موجود۔

انتظار چھہ سیٹھا کروٹھ آسان اگر امیک اند معلوم آسہِ نہ۔ یہ چھہ اندہ روس دورِرک مضمون۔ "کر یی یے” چھہ اکھ سوال تہِ تہ اکھ شکایت تہِ۔ شاید سوالہ کھۅتہ زیادہ وۅمیذ ہندس سورونس اندس کن تہِ اشارہ۔ شعرس منز چھہ نہ سیدِ سیود پننس مردس کن خطاب شاید نہ اوہ مۅکھہ زِ انتظار چھہ زیٹھیومت تہ گراو چھیہ وۅنۍ پننس پانس تہ پننس ماحولس ۔ شعرس منز چھیہ "کر” لفظن یہ سٲرے شدت پیدہ کرمژ۔ بیاکھ اہم لفظ چھہ "درشن”۔ درشن دین گوو کنہِ پاٹھۍ خوابہ کہ ذریعہ یا تصور کہ ذریعہ نظرِ یُن۔ امہ سیتۍ چھہ عبادتک تہ عقیدتک پہلو تہِ شعرس اندر یوان یمہ کنۍ اتھ رشتس روحانی رنگ دنہ آمت چھہ۔ اتھ دورِرس منز چھہ شاید وۅنۍ صرف درشے ممکن۔

شاید ہیکہ نہ امہ کھوتہ بہتر شعر جدایی ہندس مضمونس پیٹھ سپدتھ۔

اکھ پرانۍ چٹھیا ٲس

letter

تژھ تٍر یواں ٲس زِ رتھ شٹھہے رگن منز
اکھ پرانۍ چٹھیا ٲس ہتین دارِ مٔرم راتھ

یہ چھہ مظفر عازم سند اکھ زبان زد عام شعر۔

سیٹھا کم شعر چھہِ زبان زد عام گژھان۔ اکثر چھہِ امہ مۅکھہ یاد تھاونہ یوان یا روزان زِ تم چھہ اکس بییس موقعس پیٹھ بکار یوان۔ زبان زد عام گژھنک وجہ چھہ عموما شعری حسن کم تہ اکار بکار ینچ قابلیت زیادہ آسان۔ مثلا یہ شعر۔
یاد ماضی عذاب ہے یارب
چھین لے مجھ سے حافظہ میرا

یہ شعر چھہ ضرب المثل بنیومت تکیازِ اتھ منز چھہ انسانی تجربک اکھ تیتھ پزر موجود یس اکثر اوقاتن پیٹھ سانہِ احساسچ ترجمانی کران چھہ۔مگر اتھ منز چھہ نہ خیالہ کہ ورتاوہ علاوہ بییہ کانہہ شعری حسن یا خوبی۔ خیالن ولگیتُن دین چھہ نہ یکسر شعری عملہِ نیبر تکیازِ امہ سیتۍ چھہ کُنہِ معمولی خیالس منز کانہہ غیرمعمولی یا بالکل نوو پہلو نیران یمہ کنۍ پرن والۍ سندس ذہنس منز تعجب، سوال، تجسس، تحیر ، بیترِ ہوۍ جذبہ پیدہ گژھان چھہِ۔ پیٹھمس شعرس منز چھہ سوال پیدہ گژھان زِ یہ شخص کیازِ چھہ پتھ کال چہ ژیتہ آوری سیتۍ یوت پریشان؟ اتھ شعرس چھہِ واریاہ معنی ممکن۔ متکلم سند تکلیف چھہ یا تہ اوہ مۅکھہ زِ تسند پتھ کال چھہ تسندس ازکالس برعکس (1) سیٹھا مارۍ موند اوسمت، نتہ چھہ (2) سیٹھا تکلیف دہ اوسمت یس نہ تس ونیک تام مشان چھہ۔ یتھے پاٹھۍ چھہِ عذاب، یارب تہ حافظہ ہوۍ لفظ معنی چہ باریکی منز اضافہ کران۔ شعرس منز یتھہ پاٹھۍ اکہ کھۅتہ زیادہ (تہ بعضےمتضاد) معنی پیدہ کرنۍ تہِ چھہ اکس حدس تام شعری حسن ماننہ یوان۔ امہ خیال آرایی تہ کارآمدی ورٲے چھہ نہ اتھ شعرس منز بییہ کانہہ زبردست شعری حسن۔ اتھ مقابلہ چھہ مظفر عازم سند شعر محسوساتن ہند دنیا سٲنس ذہنس منز آباد کران۔

عازم سندس شعرس منز تہِ چھہ اردو شعرس رلوُن مگر برعکس خیال ۔ اظہار تہِ چھہ نہ اردو شعرکۍ پاٹھۍ سیدِ سیود بلکہ چھہ اکھ منظر اچھن برونہہ کنہِ واقع سپدان تہ تٍرِ ہند تہِ چھہ کم کاسہ احساس گژھان۔ شعرس منز چھہ لغوی تہ استعاراتی معنین ہند سنگم۔لغوی سطحس پیٹھ چھیہ شعرس منز وندہ کالچ تہ ناداری یا غفلتچ عکاسی۔کریٹھ راتھ۔ دارِ گول یلہ۔ تٍر۔ اخبار کاغذ تہِ نہ موجود۔ مجبوری۔ یہ چھہ اکھ عام ، ممکن تہ سطحی صورت حال ۔ اتھ منز چھہ ناسٹالجیا۔ استعاراتی سطحس پیٹھ چھہ یمنے عام چیزن منز علاوہ (تہ الگ) معنیچ دریافت سپدان۔ استعاراتی معنی چھہ نہ لغوی معنی یکۍ پاٹھۍ مقرر آسان۔ لہذا ہیکو اسۍ تٍرِ، دار، چٹھہِ واریاہ معنوی تعبیر کٔرتھ۔ یعنی تٍر ہیکہ اتھ شعرس منز نامساعد حالات یا اشکال تہِ، دٲر ہیکہ نظریہ یا زندگی ہند کانہہ تجربہ تہِ ٲستھ۔

شعرہ کین لفظن ییلہ اکہ اکہ سنان چھس، معنی چہ کٲژٲ باریکی چھیہ برونہہ کُن بوان۔ "اکھ پرانۍ چٹھیا” یا "دارِ مٔرم راتھ” یم لفظ کوتاہ چھہِ باوان۔ مثلا
اکھ: کُنی، غیر معین۔
پرانۍ: مشراونہ آمژ، شاید وقت بدلنس سٍتۍ بے مصرف، یا مۅلج ۔
چٹھیا: اکے، کتھہ تام پاٹھۍ پتھ کن روزمژ، اکھ بلا تعین خط۔
ٲس: پانے ٲس، شاید پیتھ، رژھراونہ ٲس نہ آمژ ، عدم دلچسپی۔
مٔرم: تکلیف دہ عمل، ناقدری، احساسہ روس۔
راتھ: مشکل وق، لاتعلقی۔

Image

نوٹ: مظفر عازم چھہ کاشرِ شاعری ہنز اکھ سنۍ تہ گنۍ آواز، یمو پنن سفر جدید کاشرِ ادبہ کین تھنگین لرِ لور شروع کور تہ تمن لرِ لور پٔکتھ نظم تہ غزل دۅشونی صنفن منز اظہارکۍ نوۍ نوۍ پڑاو پرٲوۍ۔ بہ چھس نہ فی الحال اتھ لایق زِ بہ کرہ یہنزِ "حرف ڈاے” تازہ شعرہ سۅمبرنہِ پیٹھ کانہہ تبصرہ، البتہ ونہ بہ زِ اتھ کتابہِ منز چھیہ بے مثال غزلو علاوہ ویتھ، الف،دم، زاڈیک پوش، سفراتھ ہشہ کامیاب ترین نظمہ تہِ شامل۔ یہند غزل چھہ شروع پیٹھے اکھ نون انہار ہیتھ اوسمت، یمچ مثال یہند بنم شعر چھہ یتھ پیٹھ میہ پیٹھم کینہہ لفظ نیب 27 منز شایع کرۍ۔ افسوس چھہ زِ سٲنس اکس بڈس نقادس آو نہ گنتی ہندین سانین شاعرن منز غزلہ کس سفرس منز عازم صٲب کُنہِ پڑاوس پیٹھ نظرِ۔ کشمیر یونیورسٹی ہندس غزلک فن سیمینار منز "کاشرِ غزلک سفر، کینہہ ننۍ پڑاو” کلیدی مقالس منز  پننہِ غزلہ خاطرہ اکہِ الگ مقامچ گنجایش کڈنہ خاطرہ چھہِ امۍ نقادن غزلکۍ شاعر پننہ آسایشہِ مطابق ترین درین منز باگراوۍ متۍ یمن منز شاد رمضان، عزیز حاجنی، مجروح رشید تہ برجناتھ بیتاب ہوۍ جونیر شاعر تہِ اکس پڑاوس پیٹھ  براحمان چھہِ، مگر مظفر عازم چھہ نہ تریشونی درین منز کنہِ نظرِ گژھان۔ یہ چھیہ افسوسچ کتھ۔

"روت موکل” — زندگی ہنز وۅمید

anin_kamil
روت موکل ۔۔ امین کامل

کۅ کتھ ہیتھ آو شبنم راتھ شامس
قدم سوتۍ پاٹھۍ تروون پوشہ وارے
اژتھ پوشن کنن منز راتۍ راتس
اپز اوش رود ہاراں تولہ وارے
مٹنۍ گورا ملا زن خانقیشا
ونان اوسکھ چھہ دنیا دار فانی
فریبا بوڈ یتیک اسنا تہ عیشا
رِوانی یوت اژن نیرن رِوانی
اتھۍ اندر آفتابن تروو پرتو
اچھن گاشا اونن کوسن دلن مل
عناصرہ شبنمس ڈجہ تے کڈن دو
فنا گوو گاش ڈیشتھ روت موکل
ژھنس کھنگالہ پوشو مس ملوریو
کورس ژرِ پوپ شریو زن پوشہ ٹوریو

یہ چھیہ امین کامل سنز اکھ ابتدایی نظم یۅس 1953 ہس آس پاس وننہ آمژ چھیہ تہ تسنزِ "مس ملر” کتابہِ منز شامل چھیہ۔ امہِ نظمہِ ہند تعارف سپد میہ گۅڈنچہ لٹہِ پروفیسر جیالال کول سنزِ سٹڈیز ان کشمیری کتابہِ منز تسندِ انگریزی ترجمہ کہ ذریعہ یس امہِ نظمہِ ہند سیٹھا قابل ترجمہ چھہ۔ کول چھہ امہِ نظمہِ ہنز خصوصیت استعارک نویر ونان ۔ترقی پسند تحریکہِ یمن چیزن ہند ڈول ووے تمن منز ٲس پگہچ وۅمید تہِ۔ یہ نظم چھیہ ٹاکارہ پاٹھۍ ترقی پسندی ہندس اثرس تل وننہ آمژ، مگر زندگی ہنز وۅمید تہ تسلسل یُس امیک مرکزی خیال چھہ، چھیہ انسانی وجودس تہ ادبی اظہارن منز ہمیشہ موجود ٲسمژ۔

ترقی پسند تحریکہِ برونہہ ٲس یہ وۅمید مذہب تہ ثقافتی روایژن سیتۍ وابستہ۔ امہِ تحریکہِ کٔر یہ وۅمید سماجی برابری ہندس فلسفس سیتۍ وابستہ یتھ منز عوام تبدیلی ہند مرکز بنیوو۔ جدیدیتکۍ فلسفن کٔر یہ وۅمید کلاسیکل کین مذہبی تہ ثقافتی کیو ترقی پسندی کین سماجی تہ اجتماعی پہلوون برعکس انسانہ سندس انفرادی پہلووس سیتۍ وابستہ۔ ادیب سنز وۅمید تہِ بنییہ تخلیقی عملہِ ہنز وۅمید تہ یہ سپز وۅنۍ خۅد ادب پارس سیتۍ وابستہ۔ مگر وۅمید روز ہمیشہ ادبس پتہ کنہِ کارفرما تکیازِ وۅمید چھہ اکھ بنیادی انسانی جذبہ تہ امہِ کنۍ ین یہ تہ پژھہ ہشہ باقی نظمہ ہمیشہ پرنہ یم زندگی سیلیبریٹ کران چھیہ۔

زندگی ہنز موتس پیٹھ فتح تہ زندگی ہندس تسلسلس پیٹھ وننہ آمژ یہ نظم چھیہ سانیٹ فارمہ منز۔ شبنم شخصٲوتھ تہ کۅ کتھہِ ہند ایجنٹ بنٲوتھ پیش کرُن چھیہ یمہ نظمہِ ہنز اکھ خوبصورتی تہ نویر۔ شاعری چھیہ ہمیشہ معمولس تہ معمولی یس نیبر نیرنچ کوشش کران یۅس یمہِ نظمہِ ہندس استعارس منز ظاہر چھیہ۔

کامل سندۍ پیکر چھہِ نہ خالص نمایشی نوعیتکۍ، یم چھہ موضوع کہ لحاظہ معنی خیز آسان۔ یتھ نظمہِ منز چھہ پوشن ہندین کنن منز شبنمک اژن گورن تہ ملن ہندس خالص وعظانہ تہ عملہِ روس درسس کن اشارہ کران۔ اگر پوش مندر یا خانقاہ مانون، شبنم چھہ یمن اندر وعظ پرن وول گور یا ملہ۔ آفتاب چھہ استعاراتی طور روحانی معنی رٹان، تہ امیک کانہہ وعظ پرنہ ورٲے خالص پرتو سیتۍ دلن ہنز کدورت تہ مل دور کرن چھہ گورن تہ ملن ہندس وعظس مقابلہ اکھ عملی روحانی واقع۔ ملہ تہ گور چھہِ روحانی گٹس اندرے پریتھان۔ ظہورک آفتاب چھہ نہ اچھن تہ دلن گاشرٲوتھ یمن ہندِ خاطرہ کانہہ گنجایش تھاوان۔ یتھ نظمہِ چھہ ترقی پسندی کھوتہ زیادہ کامل سندس اعتقادی رحجانس سیتۍ واٹھ لگان۔

یہ نظم چھیہ صوتی طور تہِ آوازن ہند اکھ ہم آہنگ سلسلہ قایم کران۔ نظمہ منز دیو یمن آوازن کن خاص دھیان: /و/، /س/، /ش/، /ت/، /ر/ ، /ن/۔

__

نظمہِ ہنز معنوی تہہ داری سمجنہ خاطرہ چھہِ یم کینہہ نکتہ کارآمد

۔ جاے، پوشہ وٲر
۔ کردار: شبنم (روت موکل)، پوش، آفتاب، پوشہ ٹورۍ
۔ وقت: شام/راتھ، یعنی اکہ دۅہہ کس اندس تہ دویمہ دۅہہ کس آغازس درمیان وقفہ، یتھ درمیان وقت معطل چھہ سپدان تہ امہِ کس تسلسلس چھہ ٹکھ لگان
۔ پوشہ وٲر دنیاہک، زندگی ہند استعارہ
۔ آفتاب: حقیقت، اچھن گاش انان، شک کاسان، دلن مل دور کران
۔ روانی یوت اژن نیرُن روانی۔ اتھ مقابلہ کھنگالہ تہ ژرِ پوپ۔ اکھ ڈرامایی صورت حال۔ دۅن حقیقتن درمیان اکھ تصادم۔
– گۅڈنکین ژۅن مصرعن منز چھہ پوشہ وارِ ہند فطری (نیچرل) دنیا پیش یوان کرنہ۔ امہ پتہ یم ژور مصرعہ یوان چھہِ تمن منز چھہ مثال دِتھ انسانی دنیا متعارف کرنہ یوان، تہ امہ پتہ یتہ والین ژۅن مصرعن منز بییہ وسعت دتھ فطری دنیا (شریو تہ پوشہ ٹوریو تتھہ ٹاٹھۍ انۍ متۍ زِ یہ ونن چھہ مشکل زِ ژرِ پوپ کورا شریو کنہ پوشہ ٹوریو۔)واپس اننہ یوان تہ ٲخری دۅن مصرعن منز چھہ فطری دنیاہس تہ انسانی دنیاہس میل کرنہ آمت (شرۍ تہ پوش)۔

__

مس ملر کہ وقتہ اوس کامل باقی شاعرن ہندۍ پاٹھۍ اقبال سندس اثرس تل۔  یتھ نظمہِ پتہ کنہِ گژھہِ علامہ اقبال سنز یہ نظم پرنۍ۔  کامل سنز نظم چھیہ امہ کے آزاد ترجمہ باسان، مگر کامل سنزِ نظمہِ منز چھہ اتھ خیالس موضوعی تہ تکنیکی طور ہریر واضح۔

زندگی

شبی زار نالید ابرِ بہار
کایں زندگی گریۂ پیہم است
درخشید برقِ سبک سیر و گفت
خطا کردۂٖ، خندۂ یک دم است
ندانم بہ گلشن کہ برد ایں خبر
سخن ہا میانِ گل و شبنم است

__

محمد یوسف ٹینگ چھہ غلام نبی فراق سنزِ "صدا سمندر” کتابہِ ہندس دیباچس منز اکس جایہ ونان زِ فراقن لیچھہ "دسلابہ چہ کینہہ اولین نظمہ۔ مثلا یتھ مجموعس منز موجود لوکٹ نظم ‘صبح’ یۅسہ 1957 منز تھنہ پیمژ چھیہ۔ یہ چھیہ سانیٹ کس فارمس منز تہ شاید اوس امہ برونہہ صرف دیناناتھ نادمن یتھ ہیو چیز کاشرۍ پاٹھۍ لیوکھمت۔” گوڈنی نادم سندس سانیٹس ‘یتھ ہیو چیز’ ونن چھہ عجیبے باسان۔ دویم کتھ چھیہ کاشرِ ادبہ کس امس بالغ نظر نقادس گژھ مۅچھہ برابر لیکھنہ آمتس کاشرس ادبس پیٹھ میانہِ کھوتہ ژر نظر آسنۍ۔ کامل سند پیٹھم سانیٹ چھہ فراق سنز ‘صبح’ نظمہِ برونہہ 4 وری وننہ آمت تہ 1955 منز شایع گمژِ ‘مس ملر’ کتابہِ منز شامل۔ اہم کتھ چھیہ نہ یہ زِ کاملن چھہ فراقس برونہہ سانیٹ وونمت بلکہ یہ زِ فراقن چھیہ کاملن ‘روت موکل’ سانیٹ پرۍ تھے تمی طرزہ تہ مفہومہ پننۍ نظم ‘صبح’ ونۍ مژ۔ رات تمہِ پتہ آفتاب پھۅلن، شبنم، پوشہِ ٹورۍ یم ساری چیز چھہِ فراق نہِ نظمہِ منز آمتۍ۔ یہ حیران کن ہشر چھہ نہ اتفاقی۔ یمن دۅن نظمن ہند تقابلی مطالعہ چھہ نہ مقصد لیکن یہ کتھ چھیہ ضروری زِ فراق سندس سانیٹس منز چھہ ژیلہ ژیلہ کرن واجنہِ آرایشی تہ روایتی پیکر تراشی سیتۍ صبحک منظر پیش کرنہ آمت تہ ٲخری شعرس منز یہ منظر ڈیشون پیدہ کٔرتھ تسندین امارن یتھے شوبہِ دار صبح پھۅلنک طمع ظاہر کرنہ آمت۔ یہ چھیہ فراق سنز ابتدایی شاعری یتھ پیٹھ کیٹس تہ ارداہمہ صدی ہندین انگریزی رومانٹک شاعرن ہند اثر اوس۔ یہ اثر چھہ ‘صبح’ نظمہ منز تہِ ظاہر۔