خود خواہ پانو ۔۔۔۔

سۅچھ کرال سند اکھ بٲتھ چھہ "ژیہ نو یاد رودے نہ کینہہ”۔ یہ بٲتھ چھہ امین کاملن تہِ پننہ صوفی شاعری منز دیتمت۔ گوڈنیک بند چھہ یتھہ پاٹھۍ دتھ:

بد خواہ پانو خود راہ دراکھو
ژیہ نو یا رودے نہ کنیہہ

بد خواہ لفظس چھہ نوٹ ز اتہِ نس چھہ بد خواہ بدلہ بدکار تہِ رایج۔

موتی لال ساقی تہِ چھہ یہ بٲتھ دوان تہ بدخواہ بدلہ چھہ بدکار لیکھان۔ تسند بند چھہ یتھہ پاٹھۍ:

بد کار پانو خود راہ دراکھو
ژیہ نا یاد رودے کینہہ

اتھ منز چھہِ کاملنہِ متنہ نشہ زہ تبدیلی۔ اکھ بدخواہ بدلہ بدکار تہ بیاکھ "ژیہ نو یاد رودے نہ کینہہ” بدلہ "ژیہ نا یاد رودے کینہہ”

ساقی چھہ نوٹ لیکھان "کامل صابن چھہِ یتھ بٲتس واریاہ لفظ بدلاوۍ متۍ یمہ کنۍ معنی چھہ بدلیومت”

ساقی چھہ نہ بدکار چہ جایہ بد خواہ نوٹس منز تہِ کنہِ جایہ دوان تکیاز تس چھہ باسان سہ لفظ چھہ بٲتک معنی بدلاوان۔ سوال چھہ ساقی یس کپارۍ لج بٲتکہ اصل معنی یچ خبر۔ اگر سہ کانہہ ماخذ دیہ ہے زِ بد خواہ بدلہ کیاز دیت بدکار، تیلہ ٲس اکھ کتھ مگر سہ چھہ نہ کنہِ جایہ ونان زِ بدکار لفظ کتہِ اۆن تمۍ۔ ممکن چھہ گیون والۍ آسن بدکار گیوان مگر کاملن تہِ چھہ بدخواہ کتہِ تام بوزمت۔ یہ ونن ز میون معنی چھہ صحیح تہ کامل سند معنی چھہ نہ صحیح گۆو نہ تحقیق۔ تحقیقی لحاظہ چھہ کامل سند طریقہ زیادہ صحیح۔ سہ چھہ دوشوے لفظ دوان تہ پرن وٲلس یا مزید تحقیق کرن والین ہندِ خاطرہ وتھ یلہ تھاوان۔ ساقی چھہ حتمی فیصلہ دتھ یہ وتھ بند کران۔

محفوظہ جان تہِ چھیہ کلیات سوچھ کرالس منز بٲتک یہ بند ساقی یس نش نقل کران۔

کامل چھہ بٲتس عنوان دوان "ژیہ نو یاد رودے نہ کینہہ” ساقی چھہ امہ بدلہ اتھ عنوان دوان "بدکار پانو”

اول چھہ نہ یمن بٲتن عنوانچ کانہہ ضرورت، اگر دموکھ ووجک مصرعہ چھہ امہ کنۍ مناسب تکیاز یہ چھہ بٲتچ تھیم برونہہ پکناوان۔ بدکار پانو عنوان دتھ چھہ ساقی اتھ بٲتس اکھ معنی دوان یس بٲتہ کس متنس سیتۍ واٹھ چھہ نہ تھاوان۔ ساقی سندس صوفی شاعرس چھیہ میانہِ خیالہ یہے کمزوری ز سہ چھہ اکھ متن کنہِ استدلال ورٲے صحیح تہ حتمی متن بنٲوتھ پیش کران۔ یعنی میون پیش کورمت متن چھہ صحیح، کیازِ تکیازِ میہ وۆن، اتھۍ چیزس چھہ ٹینگ تعریف کرتھ ونان ز کاملن اوس غلط متن دیتمت۔ حالانکہ ییلہ کامل سندس صوفی شاعرس اسۍ وۆن دمو، تتہِ چھہ پریتھ صفحس تلہ کنہِ نوٹ دتھ یمن منز متنکۍ بدل رایج لفظ دنہ آمتۍ چھہِ۔ یہ چھیہ ساقی یس مقابلہ کامل سندِ صوفی شاعرچ قوت۔

اگر بٲتس سنو یہ چھیوی نہ انسان سنزِ بدکاری متعلق۔ یہ چھہ وارہ کارہ ووجس منز بار بار ونان زِ ژیہ رودے نہ یاد۔ چانۍ اصل حقیقت کیا چھیہ، چانۍ زندگی کیا چھہ ژیہ رودے نہ یاد، بٲتس منز چھہ امکۍ ساری اشارہ میلان۔ اتھ منز کپارۍ گژھہِ بدکار فٹ؟

حقیقت چھیہ یہ زِ بد خواہ تہِ چھہ نہ بٲتہ کس مجموعی معنی یس سیتۍ واٹھ تھاوان۔ میانہِ حسابہ (چونکہ سٲری چھہِ پننۍ پننۍ گیل ماران) چھہ نہ یہ بدکار تہ نہ بدخواہ بلکہ "خود خواہ”۔ یعنی  سیلفش

خود خواہ پانو خود راہ دراکھو
ژیہ نو یاد رودے نہ کینہہ

سوچھ کرالن اوس اصلی یی وونمت۔ میہ کرناوۍ تو قسم!

دراو دۅنونۍ الگ الگ فتوا

amaji

یوت کیا ٲسۍ متۍ چھہِ اسۍ یکجا
دراو  دۅنونۍ الگ الگ فتوا

(لوہ تہ پروہ، 1965)

 

اماں جی گزرییہ جمہِ، ابا جی تہِ گزریوو  جمہِ۔ دۅشوے ٲسۍ زٹھس نیچوس نش ترۍ متۍ۔ یہ گۆو یکجا۔
اماں جی تٲرکھ سرینگر تہ کرکھ تتہِ دفن، اباجی تورکھ نہ سرینگر، کۆرکھ جمہِ دفن۔  یہ گۆو الگ الگ فتوا۔

اماں جی گزرییہ 30 مہِ تٲریخہ۔ اباجی تہِ گزریوو 30 مہِ تاریخہ۔ یہ گۆو یکجا۔
اماں جی گزرییہ مارچ 2013 منز۔ اباجی گزریوو اکتوبرس 2014 منز۔ یہ گۆو الگ الگ فتوا۔

(از چھہ یہندِ گزرنک  تاریخ مگر مول موج چھہ پیوان کنہِ دۅہہ تہِ یاد، شاید ازۍ کہ کھوتہ زیادہ ۔۔ منیب)

 

 

 

ملہ بابن سادن

shesh

 

میہ دین چھپریوو چانہِ قصدن تے
ملہ بابن سادن

(رحمن ڈار)

سوال: لفظ چھا چھپریوو (کامل) کنہ چھوریو (ساقی)؟

جواب: کاشرس منز چھہ تحقیق کم تہ ذاتی پسند زیادہ چلان۔ کنہِ تہِ بٲتک متن کمۍ کمہِ نسخہ پیٹھہ تل تہ نسخہ کتہِ چھہ، تہِ چھہ کم پہن نظرِ گژھان۔ `کامل سندس صوفی شاعرس چھہ صفحہ پتہ صفحہ حاشیس منز مصرعن ہندۍ مختلف پاٹھ دنہ آمتۍ اکثر کنہِ ذاتی تبصرہ ورٲے۔ کتابہ پتہ کنہ چھہ نسخن ہند فہرست تہِ درج۔ یہ چھیہ امچ خوبی۔ ساقی سندس صوفی شاعرس منز  چھہ خالے کنہِ حاشیہ، ییتہ دیتمت چھن اکثر کاملس سیتۍ اختلاف کرنہ خاطرہ۔ حاشیہ نہ دنک وجہ چھہ یہ زِ تمۍ چھہ پنن متن حتمی زونمت۔ یہ چھیہ امچ کمزوری۔

ساقی چھہ اختلاف کران تہ ونان "چھپریو چھہ صوفی شاعر کتابہِ (کامل سنز) منز درج ییلہ زن عام نسخن منز  چھوریو چھہ”۔ مگر یہ چھہ نہ ونان یم عام نسخہ کم چھہ‏؟ کیا تمن نسخن چھنا کانہہ ناو؟ تحقیق چھہ ونان نسخن ہند ناو ہیتھ ونن ز یتھ یتھ نسخس منز چھہ چھپریو بدلہ چھوریو۔ چلو مون زِ عام نسخہ چھہ پزۍ پاٹھۍ تم نسخہ یمن منز چھوریو درج چھہ۔ اگر یہے حقیقت چھیہ، تیلہ گوژھ نہ ساقی ونن "میانۍ کنۍ چھہ چھوریو درس۔” میانۍ کنۍ ؤنتھ چھہ ساقی پننین عام نسخن ہنز دلیل کمزور بناوان۔ اگر عام نسخن منز "چھوریو” چھہ، پتہ چھہ نہ میانۍ کنۍ چانۍ کنۍ کانہہ معنی تھاوان۔اگر اتہِ نس کانہہ بے معنی لفظ آسہِ ہے تیلہ ہیکہ ہو عام نسخن پیٹھ بحث کٔرتھ زِ اصل لفظ کیا گژھہِ آسن۔ چھپریو تہ چھوریو چھہ بامعنی لفظ تہ دوشوے چھہ اتھ سیاقس منز معنی دوان۔

حقیقت چھیہ یہ زِ واریاہ لفظ چھہ نہ صحیح پاٹھۍ نسخن منز درج یمہ کنۍ تم پریتھ شخص پننہِ حسابہ پران چھہ۔ کیا پتاہ چھپریو/چھوریو تہِ ما آسہِ یتھی کنہِ صورت حالک نتیجہ۔

چھپرُن گو٘و کانہہ مراد حاصل کرنہ خاطرہ منگہ منگ کرنۍ (کاشر ڈکشنری)۔  مطلب چانہِ باپتھ ووتس بہ ملہ بابن تہ سادن تام منگنہِ۔ یہ معنی چھہ نہ اتھ سیاقس منز وۅپر کینہہ۔  ساقی چھہ ونان ” یعنی چانہِ باپتھ گذٲر میہ دۅہ چانہِ برٲنژ نژۍ نژۍ تہ گندۍ گندۍ۔” اتھ معنی یس چھہ نہ "ملہ بابن تہ سادن” مصرعس سیتۍ کانہہ واٹھ لگان۔ البتہ ہیکو ؤنتھ امہ برونہمس مصرعس سیتۍ چھس واٹھ لگان۔ مگر تتھ منز چھہ مسلہ یہ زِ اکثر چھہ سانہِ شاعری منز زہ مصرعہ اکھ شعر بناوان یُس اکھ معنوی کُن بنان چھہ۔ امہ برونہم مصرعہ چھہ نہ اتھ سیتۍ رٔلتھ شعر بناوان۔ دویم یہ زِ تیلہ چھہ "ملہ بابن سادن ”  مصرعہ یتیم گژھان۔

ساقی سند چھوریو ییہ نہ توت تام صحیح ماننہ یوت تام نہ تسندۍ محقق تمن عام نسخن ہندۍ ناو ہین یمن منز چھوریو درج چھہ۔ یا یوت تام نہ تسندۍ نقاد تسندس بیان کرنہ آمتس معنی یس "ملہ باین سادن ” مصرعس سیتۍ واٹھ دِتھ ہیکن۔

کاملن چھہ حاشیس منز "ملہ بابن سادن” مصرعک محتلف پاٹھ تہِ دیتمت۔” گوش تھاو فریادن”۔ ساقی چھہ نہ یہ پاٹھ دوان، حالانکہ مختلف پاٹھ  رژھرنۍ چھیہ محققن ہنز ذمہ داری۔

______

یاونہ ٲسس تن ناون تے
ہاوسہ چھہ نہ چھاون

کیا ونہ کیتۍ گیہ اتھہ ہاون تے
یہ دنیا چھہ تاون

بہ چھس نہ ویتراون تے
تس چھہ نہ کانہہ تہِ باون

(رحمان ڈار)

سوال: یتھے کنہ چھہ بوونہ لفظس معنے لیکتھ کیا ونہ۔ تی چھا؟

جواب: نہ تہِ چھہ نہ۔

کیا ونہ کیتۍ گیہ اتھہ ہاون تے

کامل چھہ مصرعہ یتھے پاٹھۍ دوان۔ سیتی چھس حاشیس منز "کیا” بدلہ "بہ” دوان یُس بیاض رحمان ڈارس منز درج چھہ۔ ساقی چھہ مصرعہ یتھہ پاٹھۍ دوان:

بۅ ونہ کیتۍ گیہ اتھہ ہاون تے

کاشرس منز چھہ /بہ/ بدلہ زنانہ ہندِ طرفہ /بۅ / تہِ رایج۔ ساقی چھہ کامل سندِ حاشیک /بہ/ تُلتھ اتھ /بۅ/ بناوان یمہ کنۍ وۅنۍ یہ ذو معنی بنان چھہ۔ بۅ+ونہ (یعنی میں کہتی ہوں)  تہ بۅون یعنی بتراتھ۔  ظاہر چھہ "بہ ونہ” چھہ نہ زیادہ معنہ سوو، لہذا چھہ ساقی بۅونہ بتراژ ہندِ معنی کنۍ دوان۔  سہ چھہ نہ حاشیس منز کیا ونہ معنی رنگۍ دوان بلکہ چھہ تمۍ حاشیس منز  "کیا ونہ” کامل سندِ پاٹھچ ریفرنسہِ کنۍ دیتمت۔

وۅنۍ چھہ سوال دۅیو منزہ کس پاٹھ چھہ صحیح۔ امیک فیصلہ ہیکہِ صرف ذاتی ترجیح سیتۍ گژھتھ، نتہ گژھہِ نسخن ہنز شہادت آسنۍ۔ کیا ونہ چھہ صوتی طور تہِ تہ معنوی طور تہِ میانہِ خاطرہ زیادہ دلچسپ، یہ زٲنتھ زِ اتھ بٲتس منز کوتاہ اہم قافین ہند آہنگ چھہ۔/ کیا ونہ /چھہ امہ بندہ کہ گۅڈنکہ مصرعہ کین  /یا ونہ / لفظن سیتۍ ہم قافیہ۔ اتھۍ سیتۍ اوت نہ بلکہ دویمہ مصرعہ کہ /چھا ون/ لفظن سیتۍ تہِ۔ یُتے اوت نہ ژورمہِ، پانژمہ تہ شیمہ مصرعہ کین لفظن /تاون/، /ویتراون/ تہ /باون/ لفظن سیتۍ تہِ ہم قافیہ۔ بہ کرہ نہ ذاتی طور یمن قافین ہند ساز ؟/بۅون/ اننہ خاطرہ قربان تکیازِ بۅون أنتھ چھہ نہ شعرکس معنی یس منز کانہہ ہریر یا تبدیلی گژھان۔ بلکہ چھہ امہ مصرعہ پتہ ینہ والہ مصرعہ کس /دنیا/ لفظس مقابلہ اکھ رڈنڈنسی پیدہ گژھان۔ امہ علاوہ چھہ /بو چھس نہ ویتراوان/ مصرعہ کہ /بو  / لفظہ کنۍ تکرار  تہِ پیدہ کران۔ یہ چھہ نہ قافین ہند صوتی تکرار بلکہ اکوے لفظ دویہ لٹہِ ینک تکرار یس اگر کنہِ مخصوص تاثر خاطرہ اگر ورتاونہ آسہِ نہ آمت، مستحسن چھہ نہ ماننہ یوان۔

___________

ستن زرمن میہ چھہ ورتنتے
وصل چھہ ہر ساتن

(رحمن ڈار)

سوال: ساقی چھہ لفظ ورتن بدلاوان تہ دپان درمن چھہ درُس، چھا؟

جواب:  یمو منزہ کس اکھ چھہ صحیح، سہ ہیکہِ رحمن ڈار ؤنتھ۔  توہہ آسہِ نہ توجہ دیتمت۔ کامل چھہ دوان ” وصل چھہ ہر ساتن” تہ ساقی چھہ دوان "وصل چھم ساتن”۔ میانہِ خیالہ چھہ یمن دۅن لفظن یعنی ورتن تہ درمن ہند صحیح آسن نہ آسن دویمس مصرعس پیٹھ دٔرتھ۔ اگر کامل سند دیتمت مصرعہ صحیح چھہ تیلہ چھہ ورتن صحیح، اگر ساقی سند مصرعہ صحیح اوس، تیلہ چھہ درمن صحیح۔

 

یم سوال ٲسۍ مظفر عازم صابن فیس بکس پیٹھ پرژھمتۍ، کٲنسہ دیت نہ جواب۔ میہ دیت جواب۔

امین کامل سند افسانہ "گابہ گندُر”

کٲشر افسانہ اوس اکہ وقتہ داہ باہ صفحہ آسان۔ لۅکٹۍ افسانہ تہِ ٲسۍ مگر عام طور اوس افسانہ داہن صفحن اندۍ پکھۍ آسان۔ وارہ وارہ ژھوکیوو یہ۔ وجہ نامعلوم۔ شاید ژیون نثر لیکھن والیو زِ کاشر پرنک رفتار چھہ نہ تیز یمہ کنۍ زیٹھۍ افسانہ پرنۍ شاید وبال جان بنان چھہِ۔ نتہ ما چھیہ یہ افسانہ نگارن ہنز کہالت۔ کیہہ تام وجہ چھہ۔ بہرحال وجہ یہ چھہ تہ تہِ، امین کامل سندِ افسانک ہوجم تہِ ژھوکیوو تمن افسانن منز یم تمۍ 1980 یور کن لیکھۍ۔ گابہ گندر چھہ یُتھے اکھ مختصر افسانہ۔ یہ چھہ "سوال چھہ کلک” افسانکۍ پاٹھۍ خالص ڈایلاگس پیٹھ مشتمل۔ کامل چھہ یمن افسانن منز کنہِ علاوہ تبصرہ ورٲے اکھ صورت حال پرن وٲلس برونہہ کنہِ تھاوان۔ یہ افسانہ چھہ اکی آنہ واریاہن سطحن پیٹھ پرنک مطالبہ کران۔

از اوس نہ ٹرینہِ منز پرن کیت کہنی، لہذا نیوم یہ افسانہ ٹایپ کٔرتھ۔

story

گابہ گندُر

امین کامل

(دسمبر 1996)

"وچھو گابہ گندرا، یہ بہ ونے تی چھے کرُن، تی چھے ونن تہِ۔ چھُیہ منظور؟” میہ وونس دو ٹوک فیصلہ پاٹھۍ۔

قصہ سپد یہ۔ میہ آو اکھ پلاٹ ذہنس اندر تہ ہیوتم افسانہ لیکھن۔ اکھ کردار ژورُم گابہ گندر تہ ترووم پلاٹ چہ استتھۍ (سچویشنس) اندر، یہ پریتھ افسانہ نگار کران چھہ۔ مگر امس بدبختس آیہ خبر کیا ہۅنگہ تہ کورنم واد۔

استتھۍ ٲس یہ۔ اکھ وٲناکھ صحراو۔ نہ کُنہِ زن نہ زانپٹ۔ اسمانس ووکھہ بتھہِ کٹہ کال اوبر نال ؤلتھ۔ باسان سہ واو پھیریس زِ انسانس نیہِ ژپندر کٔرتھ تُلتھ تہ ٹھاسیس خبر کتھ شایہ تڑاخ کٔرتھ پٔتھرس۔ گابہ گندرس اوس تن تنہا اتھ وٲرانس اندر مویوس نظر تلِتھ اسمانس کن ونن "خدایہ یہ کتھ شنیاہس اندر آس ہینہ۔ یہ کمن پاپن ہند چھم سزا۔ میانہِ خدایہ یمہِ وٲراگہ منزہ نیرنچ کڈتم کانہہ وتھ، نتہ آسیم چھۅچھہ کتُر کرۍ کرۍ زو دین۔” امہِ پتہ اوسس گہے دچھنۍ تہ گہے کھورۍ وٲراگہ مژرس اندر دورُن نیرن وتھ ژھارنہ مۅکھہ۔ ادہ یہ گابہ گندر ووتھم بٔڈتھ تہ بولتھ "بہ پکے نہ اتھ وٲناکھس اندر، نہ دمے خدایس کن بداد۔ ژیہ ہیوتتھس بہ سیاست کارن ہندِ اندرے استعمال کرُن۔ ژیہ چھے ظہرا ہٲل گٲمژ کردار اننۍ تہ وانہِ لاگنۍ۔ مگر بہ چھہ سے نہ تمو سیدہ بوٹو منزہ۔ بالکل نہ۔”

"ہیا ما لاگ یہ بکھ” میہ وونس بُتھ کٔرتھ "سیود کرو کلامہ۔”

"ژہ کیا سیود چھکھ پانہ” امی دتم جواب "ژیہ آیی نا کُنہِ کانہہ آدم بستیاہ اتھہِ۔ کانہہ خۅش یِون اوند پوکھا۔ زنانہ مرد دۅہ دینک ویوہار کران، پھیران تھوران۔ شرۍ یمے لالہ پھلۍ ہوۍ گندان درۅکان۔ خبر ژیہ کیازِ چھے انسانن سیتۍ کھٔر۔ چھرا ویران تہ دٔدون سوچان۔ سیزن ویزن کتھن دم پھٹۍ تہ کھرۍ دار بناوان۔ میہ چھے نہ اتھ سیتۍ بروبدی۔ بہ چھہ سے نہ میژِ لۅپن کینہہ تہِ۔”

"ہیو لۅپنس ہا چھہ ٹھوس آکار پرکار آسان” میہ گوو امۍ سند واد موت "ژیہ نہ پنن بتھ، نہ تھر۔ یہ چھے تہِ چھے میون دیت، کلہ پیٹھہ نلس تام۔”

"ہنہہ۔ بڈہ منت چھیتھم تھٲومژ۔” امی کورم خندہ "ہیو میہ اوس نا پنن وجودے کانہہ، تیا؟ بہ ہا اوسس چانین کاڈین منز مزس اندر تکیس سیتۍ ڈوکھا دتھ بہت۔ ادہ پیی میہ پیٹھ نظر تہ اونتھس کڈتھ۔ میانیو شانو پیٹھۍ پننہ افسانہ نگاری ہند بندوق چلاونہ خاطرہ۔”

"ہیو ژہ چھکھ کسو تیوت” میہ آو جان منس پیٹھ "گژھو مر کنہِ نالہِ منز، یوت گُرِ میہ کرُم۔”

"نالہِ منز؟” امۍ تروو شیطانۍ کھنگالہ "تتہِ ہا کھالہم ژہ پانس مور کٔرتھ واپس۔”

"تلو تلو چھہم نا ژہ توتہِ خبر کیا لاس۔” میہ وونس اتھہ گلوتھ۔

"آسہ ہا نے لاس تہ ژورتھس کیازِ، ہہ ہہ ہہ” امس ویژ نہ میانۍ کتھ۔

"شہمت ہسا پھٔرم، بییہ کیا” میہ اوس شرارتہ سیتۍ پان الان "میہ دوپ سیدِ پدِ چھکھ، ادہ ژیہ ہیو ورہ ہولے چھم نہ وچھمت۔”

"ادہ سا تہ ژھن سارۍ سے بلایہ۔ نیایی کتھ چھہ کرُن۔” امۍ وون اطمینانہ سان ہیو "آیہ نہ پانوانۍ بروبدی، پان ماریی کتھ چھیہ۔ بہ اژے اورۍ کاڈین منز واپس۔”

"ہیو تھوہ تھوہ، تور ہا دمے اژنہ۔ خبر ژیہ کیا بوزتھس بہ۔”

"وچھ کُس دیم نہ اژنہ۔ ہیو تیلہِ لجیا میانہِ اور اژنچ خبر زِ وۅنۍ لگی۔” امۍ وونم تھیکتھ۔

"ہیو دوپمے ہا، بہ چھسے نوکر۔ تل سا تھپھ۔” میہ گنڈس گلۍ "میہ نسا چھہ نہ افسانے لیکھن۔ انس بلایہ۔”

"ژہ کسو گوکھ افسانہ نہ لیکھن وول، ہونہہ” امۍ کورم طنز ہیو "بہ ہا لیکھناوتھ، بییہ تی یہ بہ یژھہ۔ چون مجال چھا نہ ونن۔”

"کورم کُس خطا” میہ دژ ڈیکس ژنڈ "یا ژہ بنوومکھ کردار تہ ییتہِ پیٹھہ ہور تام تھوومے ناو گابہ گندر۔” بہ آس سخ ہینہ "ادہ سا تہ ون کیا چھم لیکھن، ونُو؟”

"گیہ کتھ، وۅنۍ آکھ نا لیہ” امۍ گلنوو باز زینتھ ہیو کلہ۔

"ژہ ہا تراوکھ میہ ذلیل کٔرتھ، افسانہ نگارن اتھہِ ہا اسناوہم۔”

"کینہہ تہِ اسناوے نہ” امۍ وونم اسونہِ نرم دہانہ "ژہ مان صرف میانۍ اکھ کتھ۔”

"ہیم سا مچلکہ لیکھتھ۔ بد بتھس ہے کردار بنوومکھ۔” میہ وونس پھوشتھ۔

"ادہ ژہ چھکھ بڈہ لڑایہ گور۔ یتھہ پاٹھۍ ما اندِ۔ ہنا ہیچھ تاب تحمل” امۍ دژم داے۔

"ہتہ سا ہیوچھم تاب” میہ وونس دزتھ "ون سا کیا چھم کرُن۔”

"آ، بہ ونے۔ ژہ کر میہ سیتۍ رسا مسا۔”

"ہیو، بہ کرا ژیہ سیتۍ رسا مسا؟” میہ گنڈن ریہہ "پننس کردارس سیتۍ؟ یہ ہا گوو تاون۔”

"مسا کر” امۍ وون ژٹتھ ہیو "بہ تہِ چھس نہ سوۍ پونز زِ چانین رزہ درسن پیٹھ تلہ وۅٹہ تہ لتھوہ پان۔”

"ہیو کلہ دود ہا تلتھم۔ یہ کۅسا بلایہ کٔرم پانس اگادِ” میہ تراوۍ ہتھیار "ہتہ سا کورم رسا مسا۔ ون سا کرُن کیا چھم؟”

"کرُن چھے نہ کہنۍ۔ صرف یہ زِ بہ کرے تمہ آیہ رول یُتھ میون ناو ہمیشہ خاطرہ زندہ روزِ۔۔ فلانۍ کہانی ہند کردار گایہ گندر۔”

"گوو میہ چھہ چون نگارہ واین۔ ژہ علمن کھالن” میہ ترکراویس اچھ "ہیو گایہ گندرا، تمہ ہا چھے رایہ، بوزتھا۔ بہ ہا لیکھہ تمہِ آیہ افسانہ یُتھ میون ناو ژۅپارۍ شہرہ لبہِ۔ ژہ کۅسا پھۅپھس مج گوکھ؟”

"ہہ، ہہ،ہہ،ہہ” امۍ تروو ٹھہہ ٹھہہ اسن "میہ دوپ ژیہ چھے گوج۔۔ مگر ژہ چھکھ ژکہِ ژھوژ ڈون۔ کینہہ نبا کہنۍ نہ” یہ ونان ونان لوگ ژلنہِ۔

"ہیو ہیو، ژلان کوتو چھکھ؟ میہ دژس تھانتھرتھ کریکھ "کتھ بوزو، گابہ گندرا، کتھ بوزو” امۍ بوز نہ کہنۍ۔ یہ ہیوتن میانین اچھن دیدمانہ زنتہ ہواہس اندر تحلیل سپدُن۔ بہ اوسس اتھہ موران۔ تھپھ دمہس تہ کتھ تہ کمس۔ اتھۍ منز گیم امۍ سنز پھسرارے کنن۔۔ "میون نگارہ ہے وایہ ہکھ، چونے ناو کھسہِ ہے علمن زِ کیا زبر کردار چھن تخلیق کورمت۔ تتھ چھنے ژھنمت کردار سند نہ بوزُن۔ بیہہ تہ وۅنۍ قلم رٔٹتھ دٕینہِ۔”

کامل صٲبنہِ زندگی ہندِ آخری ؤریک ٹوٹھ بٲتھ

کامل صابن اکھ خوبصورت بٲتھ۔ جدیدیت کس شورس منز چھہ یتھۍ چیز زن نہ لبنے یوان۔ یہ اوس کامل صٲبن زندگی ہندِ آخری ؤریک ٹوٹھ بٲتھ، وجہ چھیہ پتہے۔

kamilsmall

گیت
(امین کامل)

سورنہِ ہو لٔج راتھ
وندیو گاش وۅلو

وزِ وزِ کورتھم وعدہ ژیہ میونے
پدِ پدِ روزی ساتھ
ادہ کوہ ژولہم منز وتہِ ترٲوتھ
کِتھہ لسہ، کۅسہ چھیم باتھ

سورنہِ ہو لٔج راتھ
وندیو گاش وۅلو

لولچہ وتہِ اندہ وندہ ازتامت
کمۍ کس دیتمت ساتھ
گلہِ زیو کٔرتھم، بادمۍ چشمن
لجمژ چھیم وہراتھ

سورنہِ ہو لٔج راتھ
وندیو گاش وۅلو

اکہِ اکہِ گگنچہ ویسہ گرہ سکھریۍ
کنۍ زنۍ روزس پاتھ
از چھیہ نہ کنہِ اندہ کانہہ وتہ زاگے
سیدِ برہ وۅلہ از وات

سورنہِ ہو لٔج راتھ
وندیو گاش وۅلو

(لوہ تہ پروہ، صفحہ 44-43)

محفوظ شدہ: کامل تہ مسئلہ کشمیر

یہ مواد پاسورڈ سے محفوظ ہے۔ اسے دیکھنے کے لیے ذیل میں اپنا پاسورڈ درج کریں:

پتمس ستمس تھُنے

اکۍ نزدیکی دوستن پرژھ میہ یمی ہفتہ کامل صٲب کیازِ اوس ایس پی کالجہ چہ ملازمت نشہِ ڈسمس کرنہ آمت۔ یم چھہ ذاتی معاملہ مگر ییلہ اکھ شخص عوامی شخصیت بنان چھیہ، یم معاملہ تہِ چھہ زیر بحث یوان۔ کامل صٲبن چھہ اتھ متعلق اکھ تحریر لیوکھمت یس پیش چھہ۔ (منیب)

Amin_Kamil

پتمس ستمس تھُنے

یکم اپریل 1953 آس بہ ایس پی کالجہ اندرہ بحیثیت اردو لیکچرار نوکری نشہِ برخواست کرنہ۔ لفظ ٲسۍ یم:
Dismissed on the grounds of misrepresentation and absence from duty.

میہ کرِ اتھ آڈرس خلاف اپیلہ مگر تمن دراو نہ کانہہ ہرتر۔ ٲخر کور یتھہ تتھہ ایجوکیشن منسٹری ہندۍ سیکریٹری ین چٹھۍ نمبر ED-226B-52 مورخہ 12 ستمبر 1956 ڈایریکٹر ایجوکیشنس ہدایت زِ سہ پرژھہِ میہ زِ بہ چھسا انکوایری خاطرہ تیار۔ ہرگاہ آسہ، تیلہِ گژھہِ رول 32 KCS مطابق یہ کٲم سرانجام دنۍ تہ اسہِ فوری رپورٹ کرُن۔

ڈایریکٹر چھم اکہِ دۅہہ لیکھان "ژیہ کیا چھے پننس برطرف گژھنس متعلق ونن، سہ سوز اسہِ باضابطہ لیکھتھ۔” میہ لیوکھمس بہ آس برطرف کرنہ، ونۍ توم کیازِ۔ نتہ گٔیہ چھاون دٲسی۔ تہۍ بنٲوو کمیٹی۔ یہ یہ سۅ پرژھیم تتھ تتھ دمہ جواب۔ اورہ نہ سر نہ صدا۔ 5 اگست 1958 کٔر میہ ڈایریکٹرس بییہ یاد دہانی مگر جواب ندارد۔

اگست 1963 تام ٲسۍ اتھ معاملس پورہ پانژھ ؤری گٲمتۍ۔ بہ تہ بییہ کینہہ نفر ٲسۍ ریذیڈنسی روڈ کافی ہاوسس نشہِ پٹرِ پیٹھ وۅدنہِ زِ اپارۍ کنۍ آو اکھ گۅگہ جلوسہ "استفعی کو واپس لو” نعرہ دوان۔ معاملہ اوس یہ:

پنڈت جواہر لال نہروس ٲسۍ ملکی سوتھرس پیٹھ ژور طاقتور منسٹراچھ کِٹُر بنیمتۍ۔ بخشی غلام محمد (کشیر) پرتاپ سنگھ کرون (پنجاب) ؟؟ (مہاراشٹر)، ؟؟ (بنگال)۔ یمن چھٹی کرنہ خاطرہ کٔر امۍ کانگریس سیکریٹری کامراجس سیتۍ رٔلتھ اکھ بٔڈ بارہ ژۅے تیار زِ سٲری چیف منسٹر کرن نہروس پننۍ استعفی پیش۔ سہ یمس یمس مناسب زانہِ سہ سہ تراوِ پننۍ کرسی تہ رٹہِ پارٹی مضبوط کرنچ کٲم دردس۔ پارٹی چھیہ ونۍ کین قابل انسانن ہنز سخ ضرورت۔ بخشی غلام محمد تہِ آو گٕرس لاینہ، شاید یہ سونچتھ زِ میہ ورٲے کیا اندیکھ کشیرِ کورن پنن استعفی پیش۔ کٔرمو پننی اتھہ پھٔرمو، یہ سپد منظور۔

امۍ سندیو گۅگہ پچلکو ہیتۍ جلوسہ کڈنۍ ” استعفی کو واپس لو” تکیازِ تمن ٲس سٲرے ایری پیری وسان تہ ذٲتی مفاد راوان۔ یتھے اکھ جلوسہ آو ریگل چوک کافی ہاوسہ کنۍ۔ ییتہِ بہ کھڑا اوسس۔ جلوسس برونہہ برونہہ ٲسۍ ناودار نفر پونشہ مۅچھہ ؤٹتھ تہ نرِ گلوان نعرہ دوان "استعفی کو واپس لو”۔ یمن منز اوس شام لال زیون تہِ۔ یہ آو ہٕکہ میہ کن تہ دژن میہ نرِ تھپھ، یتھہ پاٹھۍ گانٹھ پوتس دوان چھیہ۔ نرِ تھپھ تھٲوتھ تہ ہیور کن رٔٹتھ رود ونان استعفی کو واپس لو۔ اُکن پہن پکتھ ووننم لۅتی، وچھو بخشی تہ مۅکلیوو، سانیو کریکو سیتۍ ییہ نہ دوبارہ کینہہ تہِ۔ ژیہ ما مونتھ زانہہ تہِ میون۔ از زن مونتھ۔ پکھ اسہِ سیتۍ وچھ امیک تر کیا نیرِ۔ میہ کریایہ نٔر مۅکلاونچ سیٹھا کوشش مگر امۍ ٲسم تپالہِ ہنز تھپھ تھٲومژ۔

جلوسہ ژاو بخشی صابنہِ کوچھہِ اندر۔ استعفی کو واپس لو کریکہ نادس دراو بخشی صاب کوچھہِ ہنزِ ہیرِ پیٹھ یۅسہ اتھ نیبرۍ کنۍ دویمس پورس کھسان چھیہ۔ امۍ کور اتھہ سیتۍ خاموش روزنک اشارہ۔ بخشی صٲبن وچھنس بہ، پننین یمن برونہہ ژٲرۍ سلکن سیتۍ۔ یہ رود ہنہِ اکس میہ کن وچھان۔ تام ووتھس شامہ زیون "بخشی صٲب تۅہہِ کتھہ پاٹھۍ دیتوہ پٲنۍ پانے استعفی۔ کامل صٲب چھہ صحیح ونان تہۍ چھو کاشرۍ قومن ژارۍ متۍ۔ قومس پرژھوا تۅہہِ استعفی دنہ برونہہ۔ کامل صٲبن یہ ونن چھہ شراہ آنہ صحیح زِ اسہِ کیا چھہ کامراجس تہ کانگریسس سیتۍ واسطہ۔ اسہِ چھہ پنن نیشنل کانفرنس، پننۍ ورگنگ کمیٹی، بڈِ پایہ پنن ٲیین۔ کامراج تہ کانگریس کتھہ کنۍ دیہ اتھ سارۍ سے پھیش۔” میہ وون شامہ زیونس لۅتہِ لۅتہِ ہیو خجل ہا ہیوتتھس کٔرتھ۔ بہ کتھ نژنووتھس۔ کورمے کیا؟ امۍ کٔرم اورہ کرٕکۍ زِ ژھۅپہ۔ ہپارۍ دژ بییہ کمۍ تام کریکھ "بخشی صٲبا سرراہ حض ترٲوتھ۔ نہ رود ۍ اورکۍ نہ یورکۍ۔ استعفی نہِ حض واپس۔”

امہ واقعہ پتہ کینژی کٲلۍ چھہ میہ اچانک کلچرل اکیڈمی اندر ملازمتک آڈر واتان۔ دراصل اوس بخشی صٲبن میانہِ برطرفی ہند آرڈر کیبنٹ بلٲوتھ سبک دوشی اندر تبدیل کورمت۔ پتمس تھنے۔

[محمد یوسف ٹینگن چھہ پننہِ "رنگہ دوے” کتابہِ اندر میہ ڈسمس گژھنس طنز کورمت۔ ٹینگ صٲب چھہ شیخ عبداللہ نہِ دستر خوانکۍ پھلۍ تلان۔ خبر امس چھا معلوم زِ شیخ صٲب تہِ آیاو 1931 ہس اندر سرکاری ملازمت (ٹیچری) نشہِ ڈسمس کرنہ۔ کیاز؟ یہ پزِ ٹینگ صٲبس اورہ یور نوم دتھ زانن۔ تمۍ لڑیاو پننہِ بحالی خاطرہ تعلیمہِ ہندس ڈایریکٹرس تہ منسٹرس نشہِ۔ مگر اندیوس نہ کینہہ۔ میہ تہِ اندیوو نہ۔ مولوی عبداللہ وکیل نس مشورس پیٹھ کور شیخ صٲبن جامع مسجدِ اندر اپز اعلان زِ تمۍ ترٲو سرکاری نوکری تہ ییتہ یور کرِ سہ قومچ خدمت۔]

آلیک پوشنول

Masmalar
اشاعت 1955

ییتہ سانیو اکثر شاعرو پننۍ ابتدایی شاعری مشرٲوتھ کھٹتھ چھیہ تھٲومژ، امین کاملن چھہ پننہِ اولین شعرہ سۅمبرنہِ "مس ملر” منزہ واریاہ کلام پننس کلیاتس (زیر ترتیب) منز شامل کورمت۔ یہندِ ابتدایی کلام منزہ چھیہ یہ اکھ نظم تہِ:

آلیک پوشنول
امین کامل

ہا نندرِ متیو نیر یہ منزُل تہ گگس تراو
مژراو اچھ کڈ واش پکھن ہاو کینہہ چکہ چاو
وۅتھ تازہ سفر پراو
نٔو زندگیا چھاو

رنگہ رنگہ ولاں جامہ گلن رنگہ روس افتاب
وچھ ٲنہ جۅین منز چھہ نژاں آب زن سیماب
ژہ تہِ لاگ کینہہ بیتاب
زیو چانۍ چھیہ مضراب

گیہ بٲے تہ بند چانۍ ہیتھ کرتام پنن ساز
انجام تہند پوشہ چمن لولہ ہژ آواز
چھیہ نہ زندگی کانہہ راز
آغاز چھہ پرواز

پتھ زندگی زانہہ ہیوت نہ وچھتھ شراکھ تہ اہریز
چھہ نہ رودمت ازتام عشق کانسہِ ہند آویز
پھٹراو یہ پرہیز
کر نار دلک تیز

ونۍ چھی ژیہ دوان پوشہ چمن تھارِ٭ وچھان پوش
تنہا ژہ بہت دورِ نہ غیرت تہ نہ کانہہ جوش
چھکھ یوت کیا مدہوش
سونتس ژہ ہنا توش

وۅتھ تراو یہ غم غصہ منزُل واے سۅکھک ساز
مضراب دِ سازس تہ کنی لولہ ہژ آواز
رٹھ یاونک انداز
پرواز کر پرواز

یہ بٲتھ چھہ دعوت زندگی۔ وۅمید یودوے تمہ زمانہ ترقی پسندی ہنز علامت ٲس، یہ بٲتھ ہیکون از تہِ امہ کہ مرکزی جذبہ کنۍ پٔرتھ۔ مایوسی، غم، غصہ، تنہا پسندی چھہ نہ انسانہ سند ِ روحک جوہر۔ کامل چھہ "مس ملر” کس دیباچس منز ونان زِ اتھ منز شامل کینژن چیزن منز چھہِ کینہہ عروضی تجربہ کرنہ آمتۍ۔ اگر یہ پزۍ پاٹھۍ عروضی تجربے چھہ، یتھ نظمہِ منز چھہ کینژن جاین فارسی تقطیعی وزنہ مطابق کھوند لگان، پرنہ کنۍ نہ کینہہ۔ کامل سنزِ ابتدایی شاعری ہنز خاصیت چھیہ امیک روایتی عشقیہ شاعری نہ آسن، یۅس نہ اسۍ خاص کر راہی، فراق یا عازم سنزِ شاعری منز وچھان چھہِ۔ اتھ منز چھہ ترقی پسندی ہند واریاہ دخل۔ اتھ منز یمہ عشقچ دعوت چھیہ سہ چھہ زندگی ہند عشق تہ امیک لول۔ "مس ملر” شعرہ سۅمبرنہِ منز چھہ نہ خلاف معمول اکھ تہِ عشقیہ غزل یا نظم موجود ییلہ زن اتھۍ زمانس منز باقی ترقی پسند روایتی عشقیہ غزلو سیتۍ تہِ پننۍ تخلیقی ٹیٹھ موران ٲسۍ۔ کاملس کشمیر یونیورسٹی ہندِ کاشرِ شعبہ کس پروپیگنڈاہس تحت اکھ خالص رومانی شاعر گنزرن والین ہندِ خاطرہ اکھ لمحہ فکریہ۔

ممکن چھہ کانہہ ما ونہِ نہ اتھ شاعری یا میانۍ پاٹھۍ ونیس صرف بٲتھ۔ مگر اکس نظمہِ تہ بییس نظمہِ یا اکس بٲتس تہ اکس نظمہِ منز چھہ نہ قسمک یا چیزک فرق، بلکہ ہیکہِ یہنز حیثیت، یہند درجہ الگ الگ ٲستھ۔ شاعری ہندۍ ظاہری جز وزن، قافیہ، ردیف، فارم، پیکر، استعارہ تہ مخصوص شعری زبانۍ ہند ورتاو چھہ یتھ بٲتس منز تہِ تہ کنہِ اعلی نظمہِ منز تہِ۔ لہذا ہیکو نہ اسۍ یتھین چیزن غیر شعر یا غیر شاعری ؤنتھ۔ یہ چھہ ممکن یم بٲتھ ہیکن ادبہ کس اعلی تہ درسی تددیسی سوتھرس پیٹھ شاعری ہندۍ صرف بنیادی درجکۍ چیز تہ تمہ کنۍ معمولی حیثیکتۍ ٲستھ۔

٭ خبر یہ لفظ پورا میہ صحیح پاٹھۍ

کینہہ دلچسپ واقعہ

مژکری

جوانی ہندین ایامن منز ییلہ کانہہ دوست کنہِ محفلہِ منزسگریٹ ڈبۍ کھولان اوس، سۅ ٲس اکۍ سے منٹس منز خالی گژھان۔ واریاہن اوس محفلن منز سگریٹ ڈبۍ کھولنس کانپھ مگر ٹیٹھ چھیہ ٹیٹھ، یہ کیتس کالس کرِ ژیڈ۔

ہردے کول بھارتی صابن چھہ میہ اکھ واقعہ بوزنوومت۔ دوپن راہی صابن کوڈ ڈبہِ منزہ اکھ سگریٹ تہ ڈبۍ دژن دروازس کن دٲرتھ تہ وونن۔ "اکوے سگریٹ اوس بچوومت۔”

کامل صاب اوس تیلنگہ۔ یہ ووتھ تہ اننۍ یہ سگریٹ ڈبۍ تہ بٲگراونۍ امکۍ سگریٹ سارنے دوستن منز اکہ اکہ۔ راہی رود کیتھ تام ہیو وچھان۔

یمن ہنزِ مژکری ہنز شروعات ما چھیہ سگریٹ ڈبہِ پیٹھے شروع گمژ؟

نٲودس چھٹی

جمہِ پیٹھہ کس مشہور گایک کندن لال سہگلس متعلق چھہ میہ بوزمت زِ تمۍ اوس پورہ زندگی اکوے بوٹھ لوگمت۔ خبر یہ چھا پوز؟

مگر کامل صٲبس متعلق چھیہ یہ کتھ پوز زِ میہ چھہ نہ کامل صٲب زانہے ناید وانس کھسان وچھمت۔ کامل صٲب اوس مستس پتھ کن کنگو کران۔ میہ چھہ سہ واریاہ لٹہِ لۅکچہ قینچی سیتۍ پتۍ کنۍ پانے پنن مس کرپان وچھمت۔

چھو مبارک یہ انجمن سازی
حض کامل چھہ انجمن پانے

کامل سند مطالعہ

کامل صابس چھہِ واریاہ ادیب عالم ونان۔ مگر میہ آو نہ از تام سمجھ زِ یہ علم کتہ اوس امس یوان؟

میہ چھہ نہ کامل صٲب گھرس اندر کنہِ کتابہِ ہند مطالہ کران وچھمت۔ سٲنس گھرس منز ٲس نہ خاص کر انگریزی ادبس متعلق کانہہ کتاب۔ صرف چھیہ میہ زہ تریہ کتابہ نظرِ گمژہ۔ ایسفس فیبلز تہ براون سند فارسی گرامر تہ عروضس پیٹھ داہن وہن ورقن ہنز اخلاق دہلوی سنز کتاب۔ یاتہ چھہ کاملن پنن مطالعہ نوجوانی ہندین دۅہن منز کورمت، نتہ چھہ سہ اکاڈمی منزے یہ کار کران اوسمت۔ کامل صٲبن چھہ افسانہ لیکھن انگریزی ادیب اوہنری یس نش ہیوچھمت، مگر سانہِ گھرِ ٲس نہ کانہہ خاص کر انگریزی یا اردو ادبچ کتاب ماسواے غالب تہ اقبال۔

کامل صابن چھہ نہ پننین تحریرن منز کٲنسہِ انگریزی ادیب سند حوالہ دیتمت۔

کتابہ کیمۍ

کامل صٲبس نش آسہ کاشرین ادیبن ہنزہ واریاہ کتابہ۔ ساری آسہنس پننۍ پننۍ کتاب دوان۔ یم کتابہ آسہ سٲنس دیوان خانس منز اکس بجہ المارِ اندر اکس اکھ پیٹھ۔ بہ اوسس اکثر بہ المارۍ کھولان تہ کانہہ کانہہ کتاب ورق گردانی خاطرہ کڈان۔

یمن کتابن وتھۍ کیمۍ۔ میانہِ ماجہ دوپ امہ ادبہ سیتۍ چھہ گھرس گۅڈے شکس آمت، وۅنۍ ٲسیا یم کاغذ کیمۍ باقی۔ تمو کور فیصلہ زِ یم کتابہ ژھنووکھ ترٲوتھ۔ کامل صابس چلیوو نہ کینہہ۔ شاید ووننکھ ساریۍ نہ، کانہہ کانہہ تھٲوو، مگر تم کتابہ دژہ شکیل الرحمانن محلہ کس اکس وٲنس مفتے کنہ پونسن، پتاہ چھم نہ۔

تیلہ کالہِ اوس تموکھ کتابہ ورقن منز کننہ یوان۔ از تہِ آسہِ۔ تمٲکس بلایہ، مگر یم ورق ٲسۍ مۅللۍ آسان، لوکن ہندس علمس منز اوس (میٲنس تہِ) یمو سیتۍ تہِ سیٹھا اضافہ سپدان۔

رفیق رازن نوو قصیدہ

کینہہ ریتھ برونہہ پیوو میہ امین کامل سندس قصیدس اکھ تفصیلی نوٹ لیکھن تکیازِ تتھ متعلق لیکھنہ آمتس اکس مضمونس منز اوس تمیک معنہِ مطلبے غلط سمجھنہ آمت۔ کاشرس منز چھہِ نہ قصیدہ لیکھنہ آمتۍ تہ نہ چھہ سون دور قصیدن ہند دور۔ بقول شفیع شوق تسندس ادبک تواریخس منز چھہ ترجمن ہند ذکر یمن منز بوصیری سند البردہ خاص طور اہم چھہ۔ یمو علاوہ چھہِ رسا جاودانی، امین کامل، رفیق رازن (خبر بییہ تہِ ما آسہِ کٲنسہِ ) اکھ اکھ قصیدہ لیوکھمت۔  

کامل سند قصیدہ چھہ کم و بیش عربی قصیدہ چہ تنظیمہِ ہنز پابندی کران۔ نوۍ مہ صدی منز چھہ ابن قطیبہ "کتاب الشعر والشعرا” ہس منز ونان زِ قصیدہ چھہ ترین حصن پیٹھ مشتمل آسان۔ نصیب، تخلص،تہ ٲخری حصہ یتھ منز فخر یا ہجو یا حکمت آسان چھیہ۔ اسۍ چھہ یم تریشوے عناصر کاملنس قصیدس منز وچھان۔

مۅغلن چھیہ پننۍ ژھاے بہت دۅن چشمن (نصیب)
فن ہاوہ تہ کیا ہاوہ یتھس وقتس ون (تخلص)
شاداب یہ ریشۍ وٲر تہ یم میانۍ سخن (فخر)

کاملنس قصیدس مقابلہ چھہ رفیق رازن بہترین قصیدہ تمۍ سنزِ گۅڈنچہ شعرہ سۅمبرنہ منز درج۔ یہ قصیدہ چھہ امۍ بحضور شیخ العالم لیوکھمت۔ اتھ قصیدس پتہ کنہِ چھہ کامل سنز افکار نظمہ ہند آہنگ الغابہ کنن گژھان، مگر یہ قصیدہ چھہ راز سندِ طرز اداہک اکھ ممتاز تہ بہترین نمونہ۔ میانہ خیالہ چھیہ کامل سند "قصیدہ” تہ راز سند” بحضور شیخ العالم” کاشرِ شاعری ہنزہ زہ اہم نظمہ یم یمن دۅن شاعرن ہندِ تخلیقی قوتکۍ نمونہ چھہِ تہ یمن دۅشونی شاعرن ہنزِ شاعری تہِ واریاہس حدس تام کلہم پاٹھۍ الگ کڈنس منز  مدد کٔرتھ ہیکن۔

بلۍ اچھرہ گیندن میون چھہ اچھرن پھرۍ پھہہ
ژھور میلہِ قلم میون چھہ معنی ورقن
گرمیوس تہ ژلۍ مصلحتن نیرتھ چل
نرمیوس تہ لگۍ ڈیر وتن پیٹھ سخنن
ژھۅکہِ میانۍ فکر روسۍ کچن ڈلہِ رفتار
تھکہِ میانۍ نظر، زون اچھن لگہِ زونن
چھس کنگہ دزاں پانہ تہ پاواں شہلتھ
چھس واوہ ہراں پانہ براں گل ہلمن
یا یکھ تہ وچھکھ میانہِ کلامک ون چھپھ
یا یکھ تہ ژھنڈکھ میانہِ خیالکۍ دٔدون

(قصیدہ، امین کامل)

یا چھی میہ تمے خواب اچھن لارۍ ونیک تام
یاچھس بہ ممت یُتھ یہ جنت گوو میہ عطا ہیو
کژتام اچھر چھم زِ یمن چونہِ جراں چھس
نورٲنۍ علمدارہ میہ باوُن چھہ مدعا ہیو
یا میانۍ کشیرے چھیہ میہ کژ سنگ بنیمژ
یا چھس بہ ظہرۍ روٹہ گومت نیول ہوا ہیو
تھووکھے نہ میہ کن گوش یوتاں ہکۍ تہِ ژھوکییم
وچھہس نہ یوتاں گردِ شروپس وتھرہ صدا ہیو

(بحضور شیخ العالم، رفیق راز)

 ییتہ کامل سندین شعرن منز جلال تہ خۅد اعتمادی چھیہ، تتہ چھیہ راز سندین شعرن منز عاجزی تہ طلب۔ میہ باسان کامل سنزِ شاعری منز چھیہ گرمی تہ راز سنزِ شاعری منز نرمی۔ کامل سنزِ شاعری منز چھہ بہ اہم تہ ژہ چھہ امہ کُے  پرتو، راز سنز شاعری چھیہ برعکس، بہ چھہ ژہ ہک پرتو۔ کامل سند قصیدہ چھہ اکھ خشمہ ہژ شکایت، راز سند بحضور شیخ العالم چھہ اکھ مظلوم آلو۔ کامل سنزِ شکایژ منز چھہ خیر تہ شرک حوالہ، راز سندس آلو منز چھیہ داد تہ بدادچ روداد ۔ دۅشوے شاعر چھہِ اکثر تضاد پیش کران۔ کامل سند تضاد چھہ تکمیلی، راز سند تضاد چھہ تخالفی۔

راز سند  بیاکھ قصیدہ "درمدح وجود” سپد میہ حال حالے مصنف سندِ طرفہ دستیاب۔ قصیدہ چھہ پیش:

قصیدہ در مدح وجود

 رفیق راز

جیرہ ہیو آو سوکوتس وۅں پھرس میٲنس تل
ناگہاں از تہِ ہیوتن روتلہِ وہراون گل
بر زباں چھے میہ شب و روز دعاٖے سیفی
تابعیا بوز ستتھ ساس پیٹھی چھم موکل
تھود تہ بوڈ یوت چھہ بس فیضِ دعاٖے سیفی
تی سپد یی میہ وونم گوو نہ زنہے ادلہ بدل
چھس بہ لب بستہ سخن چھس نہ کراں مصلحتا
یی وناں چھس تہ گژھاں تی چھہ، زباں چھیم کرتل
سلطنت میانہ سکوتچ چھیہ حدو روس تہ انیکھ
اتھۍ اندر گیر گمتۍ اکھ یہ ابد بییہ ہہ ازل
میون قالینہ یہ میژ، تحت سلیماں تہِ کتھا
چھس بہ سلطان سکوتک تہ کھڑا چھِم موکل
میون پِٹھ چھس تہ یہ میژ باج ہیواں اسمانس
میانہ بیمے چھہِ تہہ آب کھٹتھ دشت و جبل
منتظر جن تہ ملک کیتۍ اشارس میٲنس
میون حکمے چھہ شب و روز اناںیم بعمل
میون دستخط نہ یوتاں مِسلہِ پیٹھن سپدِ لگے
در جہاں یی نہ کہنی کٲم توتاں رو بہ عمل
آسہِ بے وونت سمندر تہ کُنُے دام کڈس
آسہِ صحرا تہ کرن غیب یمن پادن تل
اوبرہ لونگ آسہِ گُرکۍ پاٹھۍ کرس زین اتی
وزملا آسہِ اتھن کیتھ بہ تُلن کمچہ بدل
پٲز اسمانۍ وپھاں آسہِ کرس گردنہِ رز
بے وفا دراو اگر جن تہ کرس ہٹۍ ہانکل
نون اگر باوہ تہ برپا چھیہ قیامت سپداں
نون اگر نیرہ تہ ٲنن چھیہ گژھاں عقلہ بقل
سونتھ یی لارِ ہوتُے ناد اگر ہے لایس
یتھ کُلس تل بہ قدم تھاوہ پھلے نیریس جل
گوس ناراض تہ موسم تہِ گژھن بے تاثیر
گوو نہ منشا میہ اگر نیرِ نہ کلۍ شاخن پھل
گلشنس منز چھیہ کراں میون ذکر شاخ بہ شاخ
گیت میانی چھیہ گیواں ماچھ گنس منز یہ نحل
لوگ یمن میانہ اشیک سگ تہ لوبک یوت جہار
تاپہ کراین نہ کہنے جاٖے تمن بونین تل
چھاوہ یود ڈاے اچھر کورہ صفحس، تیمبرِ وۅتھن
شل تہ پل آب گژھن ہاوہ اگر باوژ بل
تاحشر روزِ صحیح ، لیکھہ اگر حرفِ غلط
میون اسلوب جدا میون چھہ انداز نیرل
کاکد اسمان بنی میانۍ اچھر ہے جرہہس
سنکھ اچھرن تہ یہ بتراتھ ژیہ باسی دلدل
تراوہ یود زلف پریشاں بہ اویزاں لفظن
دۅہلہِ کھین دوکھہ تہ پرواز کرن راتہ مۅغل
کم سخن ور چھِہ یواں رٹنہِ میہ نش اچھرہ زکات
ڈیڈِ تل میانہِ گداگر چھِہ صمد میر تہ لل
چھکھ پریشان سیٹھا بوز یہ سر تازہ غزل
در جہاں مسلہ چھہ کُس؟ نیرِ نہ یتھ کانہہ رت حل
کھۅر پکاں رودۍ، یوتامت نہ لگے گوکھ وتُن
مۅل کھساں رود، یوتامت نہ سۅنس گیہ سرتل
کانہہ اگر ٹھک چھہ کراں زورہ پہن دروازس
شورِ محشر چھیہ تلاں پرانہِ زمانچ ہانکل
پانہ سے سیتۍ سخن کر یہ عبادت چھیہ عظیم
پانہ سے سیتۍ شبس روز کراں جنگ و جدل
یم چھیہ کنکریٹ وۅں گوو نیج یوتامت نہ پھٹیکھ
بلبلا یی نہ کہنے پچنہِ یمن دارین تل
ژانگۍ لرزییہ لکو دوپ زِ سحر ووت قریب
کینہہ دپاں واوہ لہر ٲس نژاں شاخن تل
نے کڈِن شاخ نہ برجستہ پھلتھ آو یُہس
یا چھہ ہوکھمت یہ کُلے یا چھہ میہ ہیو اندرہ ہمل
یاد کورمکھ میہ سیٹھا داغ دلکۍ ژلۍ نہ مگر
رود پیوو شرانہِ مگر ووتھ نہ یمن وتھرن مل
یم چھ کینہہ راز میہ کرۍ فاش یمن شعر مہ ون
یم چھ کینہہ لعل کھٹتھ ٲسۍ ہتن پردن تل
ٲخرس منزلِ مقصود طوافک چھہ فنا
روزۍ تن کوت نژاں روزِ یہ بدمست بتل
ٲخرس دی یہ زمیں تیژ دنن ، لرزِ بدن
تھدۍ تہ بڈۍ بام پتھر لاینہ ین براندن تل
چھس نہ پانس تہ گژھاں نظرِ ژیہ کیا ونۍ بہ دمے
چھس بہ فی الحال کھٹتھ پانہ ستن سیندرن تل
عالمس پھیرِ نووُے زو تہ وۅتھیس وترہ بنیل
جاہلس میون عشق میون جنوں باسہِ جہل
تروو گانٹن تہ گریدن لوو بدن ٹکرہ کٔرتھ
چھوو ژھوپ دوپ تہ یہ وٲناکھ رحک گون جنگل
تیتھ شہنشہ بہ یمس زیر نگیں ملک خدا
تیتھ فقیرا بہ میسر نہ یمس ہاکھ وۅپل
وٹھ دزاں چھم تہ سرابس چھہِ وۅتھاں آبہ ملر
سیکھ دزاں آسہِ تہ باساں میہ پدین تل مخمل
تارکھ افتاب تہ مہتاب چھہِ اعراب فقط
میون مصحف چھہ یہ اسمان زمیں میانۍ رحل
میانہِ کوچے چھہ لباں لوکھ خزانن ہند پے
میانۍ دریوزہ گرے درایہ پتو اہل دول
کھۅر چھِہ کھۅربانہ ورٲیی تہِ وتن کنڈۍ چھِہ ؤوِتھ
آو فرمان متس دراو بہ اندازِ رمل
از قصیدا یہ لیکھن اوس میہ در مدحِ وجود
نظمہِ نزدیک اوے پیوو میہ انُن صنفِ غزل

 

یہ گژھہِ یاد تھاوُن کنہِ ساعتہ ہیکہِ اکھ زیوٹھ غزل تہِ قصیدچ شکل رٔٹتھ تہ اکھ قصیدہ تہِ ہیکہِ زیوٹھ غزل بٔنتھ۔ رفیق راز  چھہ تمن کینژنے شاعرن منز یمن زبردست شعرگو ؤنتھ ہیکو، شعر گو مطلب یم اکۍ سے (ردیف) قافیس منز  درجن واد شعر ؤنتھ ہیکن۔ کاشرۍ شاعر چھہِ اکثر اکھ زہ قدم کڈتھے فارمہ رنگۍ تہِ تہ فکری طور تہِ ژھۅکان۔ یہ قصیدہ چھہ بحضور شیخ العالم قصیدکۍ پاٹھۍ تخلیقی وفورچ اکھ زبردست مثال۔

قصیدس منز چھہ راز تیتھ متن تخلیق کران یُس نہ شاعری علاوہ بییہ کانہہ چیز ہیکہِ ٲستھ۔ آہنگ، لفظہ ورتاو،  پیکر تراشی، علامتی مفہوم  ہیکن کنہِ تہِ متنس شعرک درجہ دتھ۔ اتھ منز چھیہ زبانۍ ہنز متاثر کن روانی، استعاراتی اہمیت سیتۍ مملو پیکرن ہنز تخلیقی قوت ظاہر۔ راز سنزِ شاعری ہند سہ پہلو یتھ سریت  تہ حیرت وننہ یوان چھہ یا میانین لقظن منز معجزاتی تجربہ چھہِ یتھ قصیدس منز غالب۔ راز سنزِ شاعری ہندِ حوالہ اتھ قصیدس منز غیر متوقع جلال چھہ دراصل معجزاتی تجربن ہنرِ  پیکر تراشی ہند نتیجہ، یہ چیز چھہ اتھ کامل سنزِ شاعری تہ خاص کر قصیدہ کہ جلالی صورت حال نش الگ کڈان۔ راز سند نفس مضمون چھہ اکثر صورتن منز امی پیکر تراشی ہندِ پونسک دویم پاس۔ یم معجزاتی تجربہ چھہ قصن، داستانن، معجزن، جود ویی منظرن ہند ماحول یا یمن ہندۍ اشارہ قایم کرنہ سیتۍ وجودس منز یوان۔

راز سند یہ قصیدہ چھہ انسانی وجود کس تعریفس منز تہ انسان سندِ متحیر کرن وٲلہِ قوتک تہ امکانن ہند شعری اظہار۔ یہ قوت چھیہ دعاے سیفی کنۍ  یتھ متعلق واریاہ شارح بیان کران چھہ  زِ یہ پرنہ سیتۍ چھہ عجایباتن ہند ظہور سپدان تہ اتھ چھہ حیرت انگیز اثر۔ مصنف چھہ قصیدہ کس اتھ  طلسماتی ماحولس فایدہ تُلتھ  غزل تلنہ برونہہ پننین شعری قوتن تہ امکاناتن ہندس موضوعس کن تہِ پھیران۔ اتھ قصیدس چھہ کامل سندس قصیدس سیتۍ اکھ دلچسپ ہشر یہ زِ دۅشونی منز چھہِ روحانی حوالہ میلان۔ ییتہ راز سندس قصیدس منز دعاے سیفی کین روحانی قوتن ہنز کتھ چھیہ، کامل سندس قصیدس منز چھہ گۅڈنکۍ سے شعرس منز یہ روحانی حوالہ سورة البقرة  کس آیتس کن اشارہ ۔ مۅغلن چھیہ پننۍ ژھانپھ بہت دۅن چشمن۔  تمہ پتہ چھہ یہ روحانی اشارہ  قصیدس منز وسجار لبان۔ امہ سورہ شریفچ تھیم "منکر حق” چھیہ پورہ قصیدک موضوع بنان ۔ دۅشوے مصنف چھہِ روحانی صورت حالس پننس فنس سیتۍ واٹھ دوان۔