تابانہ چہہ افتابہ مگر ہے قسمت

شیرازہ کس خصوصی شمارہ امین کامل نمبرس منز چھہ پروفیسر مرغوب بانہالی ین، کامل سنزِ قصیدہ نظمہِ ہند رسا جاودانی سندس پیش رو قصیدس سیتۍ اکھ تقابلی مطالعہ پیش کورمت۔ اتھ مطالعس منز یم نتیجہ کامل سندس قصیدس متعلق کڈنہ آمتۍ چھہِ، تمن ہنز تصحیح چھیہ کاشرِ ادبچ یہ شاہکار نظم (بقول محمد یوسف ٹینگ) سمجھنہ خاطرہ ضروری۔

مرغوب چھہ اتھ مختصر تقابلس منز زہ کتھہ برونہہ کن انان، بلکہ چھیہ یمے زہ کتھہ تقابلک مقصد تہِ۔ اکھ یہ زِ رساجاودانی سندۍ قصیدن چھیہ کاملس پنن قصیدہ وننچ تحریک دژمژ۔ دویم یہ زِ ییتہِ پیش رو  قصیدس منز بھدرواہ کہ حسنکۍ تعریف چھہِ، کامل سندس قصیدس منز چھہِ کشیرِ ہندِ حسنکۍ تعریف۔ ییتہِ ہُتھ منز 26 شعر چھہِ، یتھ منز چھہِ 41 شعر تہ امی تناسبہ چھہ اکھ بییہ کس «برونہہ نیران»۔ مرغوب سنزہ یم دۅشوے کتھہ چھیہ اکھ اکس سیتۍ تعلق تھاوان تہ دویم سراسر غلط۔

گۅڈہ تُلو اسۍ دویم کتھ۔ تمی منزہ نیرِ گۅڈنچہ کتھہِ ہند ژھۅژر۔ رسا جاودانی چھہ پننس قصیدس منز بھدرواہ چہ سرزمینہِ ہندِ حسنکۍ، اتہِ کین بسکینن ہنزِ خۅش خلقی تہ اتہِ کہ موسمہ چہ شادابی ہندۍ تعریف کران۔ یہ چھہ مرغوب سندۍ نے لفظن منز «وطن پرستانہ» قصیدہ۔ مگر کامل سندس قصیدس وطن پرستانہ ونن چھہ نہ صحیح۔ یہ دھوکہ چھہ مرغوبس اتھ قصیدس منز کشیر ہنزِ خوبصورتی متعلق کینژن شعرن ہنزِ موجودگی کنۍ لوگمت۔ سہ چھہ اتھ پورہ قصیدس نہ سنیومت تہ نہ چھین پننہ مقصد چہ جلد بازی کنۍ سمجھنچ کوشش کرمژ۔ کامل چھہ نہ کشیرِ قصیدہ لیکھان بلکہ «پننس پانس» یمہ کنۍ یہ قصیدہ پننۍ اکھ الگ اہمیت تھاوان چھہ۔ امہ قصیدک موضوع چھہ امہ کس گۅڈنکۍ سے شعرس منز نون:

تابانہ چھہ افتابہ مگر ہے قسمت
مۅغلن چھیہ پننۍ ژھانپ بہت دۅن چشمن

یعنی کامل سنز تخلیقی شخصیت چھیہ آفتابکۍ پاٹھۍ ادبہ کس آسمانس پیٹھ گاہ ژھٹان مگر افسوس زِ وچھنہ خاطرہ چھیہ نہ اچھ۔ اندۍ پکھۍ چھہِ راتہ مۅغل یمن پننین اچھن ہنز ژھانپھ امہ نظارہ نش محروم تھٲوتھ چھیہ۔ کامل چھہ برونہہ کن پننس پانس حق کس ظہورس سیتۍ مشابہت دتھ تہ وقتہ کین نمرودن پنن پان ژیتس پٲوتھ اتھ خیالس منز خیر وشرک تواریخی، روحانی سرینیر تہ تناظر پیدہ کران۔

گویا قصیدچ شروعات چھیہ یہ زِ خدایس اوس کامل زنمس انن۔ یتھ جایہ سہ زنمس اونن سۅ بنٲون تمس ظاہری حسنہ کنۍ شایان شان۔ امی تعلقہ چھہِ قصیدہ کس گۅڈنکس حصس منز کشیرِ ہندِ مارۍ منزرکۍ 8 شعر آمتۍ۔ کامل چھہ یمن تعریفن ہند وجہ یتھہ پاٹھۍ بیان کران:

ازلے ژیہ کورے مٲنزِ اتھو یمۍ شابش
تس ٲس خبر آسہِ یہ کمۍ سند مسکن 

امہ پتہ چھہ ینہ والین نون (9) شعرن منز  پننۍ تعریف کران ۔ مثلا:

اکھ جلوہ اگر ہاوہ متن ہتھ معشوق
کم اوش پننۍ بھول گژھن نوش لبن

بلۍ اچھرہ گیندن میون چھہ طرحن پھر پھہہ
ژھور میلہِ قلم میون چھہ کیا تاں ورقن

غم میون چھہ گل خندہ بشارت پگہچ
کُس زانہِ بہ کۅس زان کراں چھس حرفن

قصیدس منز چھہ کنہِ حدس تام اکھ ٹریجڈک صورت حالک ہیو ماحول پیدہ گژھان۔ اکھ جلال آور تخلیقی شخصیت، جاے تہِ تس شایان شان مگر وقت – وقت چھہ فن کہ لحاظہ ناموزون، قدر ناشناس۔ قصیدس منز چھہ پننیو تعریفو پتہ شین ستن شعرن منز وقتہ چہ ناموزونیژ ہند بیان۔

افسوس زِ ژھۅژہ کانۍ بنیم سرہنگ
شکرانہ میہ کن دھیان کمے تھوو ہوسن

نٹۍ نغمہ تہ کٹۍ ڈالہ چھہ تہذیبک رنگ
فن ہاوہ تہ کیا ہاوہ یتھس وقتس ون

خۅددار ضمیرن چھہ حکم کرتلہِ شرم
اعلان چھہ شیطان وچھتھ پیون سجدن

وقت سازگار نہ آسنکۍ، بے قدری یا بے توجہی ہنزِ شکایژ ہندۍ حوالہ چھہِ شاعرن نش کھلہِ میلان مگر تواریخی حوالو کنۍ چھیہ کامل سندِ قصیدچ معنی خیزی ہران۔ اتھ منز چھہ کامل بنی نوع آدم سنزِ تخلیقہِ ہندس واقعس کن اشارہ کرتھ کشیرِ ہشہِ مارۍ منزِ  جایہ جنت تہ دنیاہس سیتۍ، پننس پانس ظہور آدمس تہ وقتس شیطان سنزِ چالاکی سیتۍ استعاراتی واٹھ دوان۔ ٲخرس پیٹھ چھہ کامل پننہِ انا پسندی تہ کشیرِ ہنزِ شادابی گواہ بنٲوتھ پننس فنس منز اطمینان تہ بقا لبان:

چھس نار تہ نارس چھیہ نہ پوراں کانہہ ریہہ
چھس آب تہ آبس چھہ نہ دامن ادرن

یوت تام چھہ بترٲژ تہ افتابس سنگ
شاداب یہ ریشۍ وٲر تہ یم میانۍ سخن 

یہ چھیہ مختصر پاٹھۍ امہ قصیدچ تفہیم۔ امہ پتہ چھیہ نہ شکچ کانہہ گنجایش زِ کامل سندس قصیدس چھہ نہ رسا سندس وطن پرستانہ قصیدس سیتۍ کانہہ موضوعی تعلق۔ یمن ہندۍ موضوع چھہِ الگ۔ اکھ چھہ قدرتی نظارن ہنز تصویر کشی تہ بیاکھ قصیدہ کہ معیاری تعریفہ مطابق اکس با اثر شخژہ (کامل) سندۍ گۅن گیوان۔ لہذا چھیہ نہ مرغوب سنز 26 بمقابلہ 41 شعر تہ تمہ تناسبہ یمن قصیدن ہنز مان مان کانہہ مطلب تھاوان۔ وۅں گوو یہ کتھ چھیہ ضرور زِ یمن ہند وزن تہ قافیہ نظام چھہِ کنی۔ اتھ متعلق چھہ کامل ونان «وری واد برونہہ دژ میہ شاید مرزا عارف سندس وننس پیٹھ لال چوک وۅستہ کھار٭ سندس وانس منز رسا سندس مسودس نظر تہ کینہہ تعارفی سطرہ لیچھمس تتۍ نے۔» کامل چھہ مزید لیکھان: «رسا صابنۍ بیاض پران پران گوو امیک یہ مصرعہ میٲنس ذہنس اندر جاے گیر ‹یا یکھ تہ وچھکھ پانہ وناں کتھ جوبن›۔ وقتس سیتۍ گوو میہ مشتھے یہ مصرعہ چھہ کہند۔ کتھ آیہ تہ گیہ۔ مگر امہ پتہ واریاہ وری گژھتھ  ییلہ میہ قصیدہ نظم لیکھنۍ ہیژ یہ مصرعہ آم غیر شعوری طور برونہہ کن تہ بنیوو میانہِ نظمہِ ہندِ قافیہ نظامچ بنیاد۔»

اگر کاملن رسا جاودانی سنزِ دیکھا دیکھی منز قدرتی نظارن ہنز تصویر کشی کٔرتھ کشیرِ ہندس شانس منز قصیدہ وونمت آسہِ ہے، تیلہ بنہِ ہے رسا سند قصیدہ صحیح معنیس منز محرک۔ چونکہ کامل سند قصیدہ چھہ موضوعی طور بالکل مختلف، لہذا چھہ نہ یمن دۅن قصیدن درمیان ہیتی ہشرہ علاوہ کانہہ رشتہ۔ کاملن چھیہ پننہ قصیدہ خاطرہ رسا سندِ قصیدچ زمین تسندین ذہن نشین مصرعن ہندِ حوالہ ورتٲومژ تہ مرغوب بانہالی سندِ طرفہ امچ نشاندہی چھیہ پرن والین ہندِ خاطرہ دۅشونۍ قصیدن متعلق اکھ دلچسپ شیچھ۔ باقی یُس شعر لرِ لور تھٲوتھ یمن ہند تقابل کرنہ آمت چھہ سہ چھہ نہ یمن قصیدن متعلق کانہہ کتھ گاشراوان بلکہ مرغوب سنزِ شعر فہمی شک آور بناوان۔

شعوری طور یا غیر شعوری طور کامل سند پننہ قصیدہ خاطرہ بیۍ سنز زمین (وزن تہ قافیہ) ورتاون چھیہ پریتھ ادبہ چہ، خاص کر مشرقی شعری ادبہ چہ روایژ ہندین حدن منز اکھ عام کتھ۔ زمینن ہند ہیوت دیت چھیہ فارسی، اردو تہ کاشرِ شاعری منز اکھ مسلم حقیقت تہ اکھ مثبت روایت۔ نہ صرف چھیہ اکھ اکۍ سنزہ زمینہ، بلکہ مضمون تہ استعارہ حتی کہ پیکر تہِ یسلہ پاٹھۍ ورتاونہ آمتۍ تہ کالہ پگاہ چھہِ مرغوب سندِ دسۍ تہِ ورتاونہ یوان۔ شاعری ہند یہ موضوعی تہ ہیتی تسلسل چھہ متنن ہندِ حوالہ جاتی نظامک اکھ حصہ۔ یہ حوالہ جاتی نظام چھہ رسومیاتن، شعری ہیتن تہ تجربن/موضوعن ہنز اکھ شعوری تہ غیر شعوری کرۍ ہانکل یمہ سیتۍ ادبچ نہ صرف تخلیق بلکہ تفہیم تہِ ممکن سپدان چھیہ۔ امہ پوت منظرہ پتہ چھیہ مرغوب سنز یہ گراو زِ «ادبی دیانتک تقاضہ گژھہِ ہے پورہ اگر کامل صٲب کم از کم حاشیس منزے رسا صٲبنہِ تحریک دنک ذکر کرِ ہے» بے معنی بنان۔ گراو اگر صحیح تہِ مانون#، مگر محض امہ گراوِ مۅکھہ قصیدک غلط مفہوم پیش کرُن چھہ نہ صحیح۔

٭ بقول کامل وۅستہ کھار «اوس درویش حسابہ وانس منز آسان۔ کنن دنن نہ کہنی۔ دکان اوس پریتھ وزِ ادبی، سیاسی، مذہبی عقیدت مندو سیتۍ بٔرتھ آسان تہ پانوانۍ بحثہ مباحثہ کران۔ اڈۍ اژان تہ اڈۍ نیران۔»

# اگر بییۍ سنز زمین ورتاوتھ حوالہ دین ضروری چھہ تیلہ گژھہِ مرزا غالب یا باقی شاعرن ہندین غزلن پیٹھہ کنہ زمینہِ ہندین مالکن ہند ناو بطور حوالہ لیکھنہ یُن، تیلہ گژھہِ راہی سندین نصفہ کھوتہ زیادہ غزلن پیٹھہ کنہِ کامل سند ناو آسن۔

فروعی معاملہ

1961 ٹھس دوران وننہ آمژن دۅن نظمن ہند مطالعہ چھہ سیٹھا دلچسپ۔ اکھ کامل سنز “نیتھہ ننۍ معنی” تہ بیاکھ راہی سنز “ریہہ تہ رقص”۔ مگر میہ چھہ نہ ییتہِ نس تحسین تہ تنقید کہ لحاظہ یہند تقابلی مطالعہ مقصد۔

دوشوے نظمہ چھیہ یمن شاعرن ہنزہ اہم نظمہ، خاص کر تمہ زمانہ چہ۔ دۅشوے نظمہ چھیہ اکۍ سے وزنس منز لیکھنہ آمژہ، کاملنۍ اختصارہ سان تہ راہینۍ زیچھر دِتھ۔ دوشوےنظمہ چھیہ غزلکۍ پاٹھۍ خودمختار شعرن پیٹھ مبنی، کاملنۍ زیادہ تہ راہی ینۍ کم۔ دۅشونی نظمن منز چھیہ کتھ لگ بھگ تہ جزوی طور ہشی وننہ آمژ، کاملنۍ طنزچ ژھاے ہیتھ، اشاراتی تہ رمزیہ اندازس منز تہ راہی سنز کتھ سیدِ سیود تہ بیانہ اندازس منز۔

وٲنسن پیٹھ کمۍ دوریر یوژھ
تمہ پژِ ما سنسارس زایہ
(کامل)

فرصت کم تے ہاوس کیتۍ
پرارُن گوو بلۍ ژاپن گار
(راہی)

یم ہشر چھہِ دلچسپ:

زلفن چانین ہند گون سایہ (کامل)
چانین زلفن مشکنۍ دار (راہی)

کمۍ دوپ ییتہ چھیہ نہ آدمۍ بوے
یم کیا ، ادہ چھا ساریۍ ژھایہ (کامل)
عرشس پیمژ آدمۍ ژھاے
فرشکۍ سجدے وارفتار (راہی)

کامل سنز نظم چھیہ گلریز رسالہ کس فروری 1961 شمارس منز چھپان تہ راہی سنز نظم چھیہ مارچ 1961 شمارس منز چھپان۔ دوشوے نظمہ چھیہ سیٹھا معمولی تبدیلی کرنہ پتہ یمن شاعرن ہنزن شعرہ سۅمبرنن منز شامل۔ کاملنۍ "لوہ تہ پروہ” (1966) تہ راہی سنز "سیاہ رودہ جرین منز” (1997)۔ راہی چھہ کتابہ منز اتھ نظمہ تلہ کنہِ اکتوبر 1960 تاریخ دوان۔ (میانہ خیالہ چھہ نادم تہ راہی سنزن کتابن منز واریاہن چیزن غلط تاریخ دتھ۔) اگر یہ نظم اکتوبر 1960 منز وننہ ٲس آمژ، راہی ما دیہ ہے تیلہِ گلریز کہ فروری 1961 شمارہ خاطرہ شرین ہند خاطرہ "نقلہ ژور” ہش بے معنی نظم یا نومبر 1960 کہ شمارہ خاطرہ امہ اہم نظمہِ بدلہ پننۍ اکھ روایتی غزل یمیک مطلع چھہ:

دلہ میانہِ بیہ سۅکھ روز مگر کرۍ ز نہ تنگ دل
شمعو ژیہ ہری سوز اگر شولہِ یہ محفل

اتھ غزلس چھہ راہی پننہِ کتابہِ منز تلہ کنہِ تاریخ جنوری 1960 لیکھان یعنی سہ چھہ تمۍ سندِ مطابق اکتوبر 1960 منز وننہ آمژ "ریہہ تہ رقص” ہش بہترین نظم اوک پاسے تھٲوتھ  نو ریتھ پرانۍ غزل چھپنہ خاطرہ دوان۔ یاتہ چھہ نہ راہی یس پننہِ نظمہِ ہنز اہمیت معلوم ٲسمژ نتہ چھہ سہ اتھ کھٹتھ تھاون ضروری زانان اوسمت۔ پیٹھمہِ غزلک اکھ دلچسپ طنزیہ شعر چھہ:

امہ سیتۍ اگر دور دلن سپدِ کدورت
مۅلوُن چھہ نہ شعرس تیلہِ گۅنمات چھہ کامل

یہ شعر چھہ راہی "سیاہ رودہ جرین منز” کتابہِ منز غزل شامل کرنہ وزِ ترٲوتھ ژھنان۔ کاملن کر چھیہ پننی نظم ونی مژ تہ چھیہ نہ پتاہ۔ مگر سہ چھہ یہ نظم "کاشر بزم” چہ فروری 1961 چہ میٹنگہِ منز پران۔ راہی تہِ اوس اتھ میٹنگہِ منز شامل۔ تمۍ پور نہ اتھ منز کانہہ چیز۔ امہ برونہہ چھیہ امہ بزمہِ ہنز میٹنگ جنوری 1961 منز گژھان یتھ منز راہی "فتح” تہ "معافی نامہ” پران چھہ۔  کامل سنزِ "نیتھہ ننۍ معنی” نظمہِ متعلق چھہ اختر محی الدین میٹنگہِ منز ونان زِ "اسہِ سارنے اوس یہ خیال رٔٹتھ زِ برونٹھ کن چھا لیکھنچ کانہہ وتھا کنہ نہ۔ اسہِ یا اوس شعرن ابہام گژھان نتہ ٲسۍ رومانیتس کن دوران۔ یہ نظم چھیہ رمز پیش کٔرتھ اکھ صحت مند وتھ ہاوان۔” راہی چھہ اتھ "نفیس نظم” ونان تہ مقبول (بقول مظفر عازم شاید مقبول حسین جرنلسٹ یس "مزدور” اخبار کڈان اوس) "یہ نظم چھیہ تمہِ اکہِ نوِ ترایہ ہند دسلابہ کران یتھ اشاریت ونان چھہِ۔” گویا راہی سنزِ "ریہہ تہ رقص” نظمہ ہند چھہ نہ کٲنسہِ پے پتاہ اوسمت۔ مگر راہی سنز نظم چھیہ رہہِ (10) ریتہ پتہ یکدم گلریز کس مارچ 1961 منز ننۍ نیران۔

رفیق راز چھہ میٲنس بلاگس (ونان کیہہ تام) پیٹھ اکس پوسٹس پیٹھ کمینٹ کران ونان "کاشرس منز اوس اکھ وبا پھٲلیومت۔ کانہہ اوس لیکھان کنہِ بحرس منز غزل تہ سیتی اوس دعوی کران زِ یہ بحر اون میۍ کاشرس منز۔ میہ لیوکھ 1975 منز اکھ غزل۔ (بہ چھس کنے تہ وسکھنا میہ نش خدایہ نیصف رآژ) بہ اوسس امہ وزِ یونورسٹی منز ایم اے کران۔ راہین بوز یہ غزل۔ واریاہو بوز یہ غزل۔ یہ غزل گیہ سیٹھا مقبول۔ میہ تہِ کور دعوی زِ ہتہ سا ببا یہ بحر اونوہ میہ گوڈنچہ لٹہِ کاشرس منز۔ کینژِ وہرۍ چھپیہ راہی صٲبنۍ غزل ( زہر ٲخر، شہر ٲخر) اتھۍ بحرس منز۔ غزل آیہ میانہِ غزلہ پتہ دۅیہ ترییہ وہرۍ لیکھنہ مگر تاریخ تروونس 1975 یعنی سے سنہ یتھ منز میہ پننۍ غزل لیچھمژ ٲس۔”

غلام نبی فراق چھہ "کاشر بزم” چہ جنوری 1961 چہ میٹنگہِ منز پننۍ نظم "بلبلس کن” پران یۅس اتھۍ ریتس منز وننہ ٲس آمژ (بحوال "صدا تہ سمندر”)، راہی چھہ پننہِ زہ نظمہ "فتح” تہ "معافی نامہ” پران، مگر ییلہ یمو منزہ دویم نظم چھپان چھیہ تاریخ چھہ اپریل 1958 دوان (بحوالہ "سیاہ رودہ جرین منز”)۔ تریہ وری پرون کلام۔

ممکن چھہ راہی سندۍ پننین نظمن تہ غزلن تلہ کنہِ دنہ آمتۍ تاریخ آسن صحیح۔ مگر واریاہن جاین چھہ شک جاے رٹان خاص کر ییلہ سہ رسالن منز کلام چھپاونہ خاطرہ سوزان چھہ تہ تمن تلہ کنہِ داہ داہ وری پرون تاریخ دوان چھہ۔ ممکن چھہ راہی آسہِ ہے نہ کنہِ وجہ کنۍ تازہ کلام نون کڈن یژھان یا کلام آسہِ ہے یوتاہ زیادہ زِ نوس آسہِ ہے ژیرۍ وٲرۍ یوان۔ نتہ آسہِ ہے مۅل ہرراونہ خاطرہ پتھ پتھ تھاوان۔ تحقیقچ شروعات چھیہ شکہ سیتۍ سپدان۔ وۅمید چھیہ کاشرِ شاعری ہندس تواریخس سیتۍ دلچسپی تھاون والۍ دوست کرن یمن معاملن کن غور۔ شفیع شوق سند "کاشرِ ادبک تواریخ” یودوے سیٹھا اہم کٲم چھیہ تہ سیٹھا فایدہ مند کٲم چھیہ، خاص کر طالب علمن ہندِ خاطرہ، سۅ چھیہ نہ یتھین معاملن واش کڈان یعنی تتھ منز چھہ تحقیق کم تہ تنقیدی تبصرہ زیادہ۔ کانہہ ونہِ یمن فروعی معاملن سنن گوو وقت راوراون مگر کنہِ تہ ادبک تواریخ چھہ نہ یمن معاملن کن توجہ کرنہ ورٲے مکمل۔ از چھہِ نہ اسۍ پننین پرانین شاعرن متعلق اپزو کتھو ورٲے کہنی زانان۔ حبہ خاتون چھیہ ارنہِ مال بنان تہ ارنہِ مال حبہ خاتون۔ ادبی تواریخ لیکھن وول اوس نہ کانہہ، ادبی تواریخ لیکھن وول چھہ نہ از تہِ کانہہ۔ مرغوب بانہالی چھہ اکس مضمونس منز کامل سنزِ "قصیدہ” نظمہِ کتابہِ اندر تلہ کنہِ دنہ آمتس 1970 تاریخس پیٹھ شک کٔرتھ لیکھان زِ "اتھ بعد زمانی پھیرس ہیکن پگہکۍ محقق پانے سام ہیتھ” حالانکہ یہ نظم چھیہ تمن برونہہ کنہِ نیب اکتوبر 1970 کس شمارس منز سرس چھپیمژ۔ "قصیدہ” ما اوس اکھ بیاکھ غزل یہ روزِ ہے نہ یاد۔ یتھ ادبی کمیونٹی یوتاہ مشرفہ آسہِ تہ ییژاہ لاتعلقی آسہِ، تتھ منز چھیہ ادبی مورخ سنز ضرورت زیادہ۔ کامل چھہ "یم میانۍ سخن” کتابہِ ہندس سرنامس منز لیکھان زِ "بٲتن الگ الگ تاریخ آسن چھہ نہ ضروری تکیازِ شاعری چھیہ نہ تٲریخواری مطٲبق مۅلون سپدان۔ وۅنۍ گوو فروعی معاملہ ونۍ راونس چھہِ کم کاسہِ مدد کران۔” کامل سنز کتھ چھیہ صحیح مگر حقیقت چھیہ یہ زِ یم فروعی معاملہ تہِ چھہِ اہم آسان۔

بادشاہ بیگم غلام دِ

یاد چھم نہ پیوان، کمۍ تام پرژھ میہ حال حالے زِ کامل سندس یتھ شعرس کیا معنی چھہ:
کامل امس ہے ڈیکہ ٹیکس تام واتہِ آب
کینژھا یکس ژہ بادشاہ بیگم غلام دِ

میہ ہیوک نہ تمس کانہہ جواب دتھ۔ وجہ چھہ یہ زِ واریاہ شاعری چھیہ تژھ تہِ یتھ نہ کانہہ معنی چھہ۔ یا یۅس معنی کاری ہنزن کوششن چلینج کران چھیہ۔ واریاہ لوکھ چھہِ تاویلہ، معنی ضرور پشراوان تہ سہ معنی بار بار پرن والین آپراونہ سیتۍ چھہ یتھین شعری اظہارن تہِ مقرر معنی قایم کرنہ یوان۔ میہ چھیہ الیٹ سنز مشہور نظم "پروفروک” ذہنس منز یوان۔ اتھ نظمہِ کیا معنی ہیکو کٔرتھ؟ میہ چھیہ کم از کم داہہ پنداہہ لٹہِ پرمژ مگر ہیچم نہ سمجتھ، معنی کرن تھاوۍ تو الگے۔ حالانکہ یژھہِ ہشہِ نظمہِ یۅس زبانۍ تہ فارمہِ سیتۍ تجربہ کین نامعلوم حدن تام واتنچ کوشش کران چھیہ ، تہِ چھیہ تاویلہ کرنہ آمژہ۔ دور کیا چھہ گژھن لل دیدِ ہندۍ شعر چھہِ ، مثلا

آمہ پنہ سدرس ناوِ چھیس لمان
کتہِ بوزِ دے میون میہ تہِ دیہِ تار

اتھ کس معنی کرو، یہ کتھہ پاٹھۍ ہیکو سمجتھ؟ ناوِ چھا پنہ سیتۍ لمنہ یوان؟ سہ تہِ سدرس منز۔ کمہِ پنہ سیتۍ ؟ سہ تہِ ییلہ لمن وول پانے ناوِ منز بہت آسہِ۔ مگر اسہِ چھیہ یتھین شعرن تہِ معنی یک تعین ضروری زٲنتھ تاویلہ کرمژہ۔ کانہہ شاعری چھیہ معنیس چلیبج تہ کران۔ ضروری چھہ نہ یہ آسہِ بٔڈ شاعری یا امہ قسمکۍ سٲری شعر آسن بڈۍ۔ مگر یہ چھہ زانن زِ امہ قسمچ شاعری تہِ چھیہ سپدان۔ لل دیدِ ہندِ شعرچ موسیقی چھیہ متاثر کران تتھے پاٹھۍ یتھہ پاٹھۍ الیٹ سنزِ نظمہِ "پروفروکچ” موسیقی چھیہ۔

کامل سند شعر تہِ چھہ ہتہ بدین شعرن ہندۍ پاٹھۍ موسیقی ہند نمونہ۔ یوٚدوے سانۍ کینہہ نقاد غزلہ چہ اتھ موسیقی ناپسند کرنہ لگۍ متۍ چھہِ تہ پزۍ پاٹھۍ شاعری ہندِ خاطرہ ناگزیر چھیہ نہ، امہ چہ اہمیژ تہِ ہیکو نہ انکار کٔرتھ۔ ڈیکہ ٹیکس تہ یکس، تام تہ غلام قافیو علاوہ یم زیچھہ آوازہ کامل سندس شعرس منز چھیہ مثلا / تا، وا، آ، ژھا، با،شا، لا/ تم چھیہ شعرس منز موسیقی ہنز اکھ خوشگوارسطح بناوان۔

شعرن منز واضح معنی آسُن چھہ نہ ضروری، مگر یہ چھہ ضروری زِ شعر گژھہِ کُنہِ معنی یس کن اشارہ کرن۔ واضح معنی نہ آسنہ کنۍ چھہ شعر بعضے اکہ کھوتہ زیادہ معنی ین کن اشارہ کران۔ شاعری (فنون لطیفہ) تہ باقی علمن منز چھیہ بنیادی فرق یہے زِ ییتہ باقی علم صحیح تہ واضح فہم و ادراکس کن لمان چھہِ، شاعری چھیہ اتھ چلیبج کران۔پروفروک نظمہِ ہند معنی چھہ پرناون والیو نقادو تتھے پاٹھۍ واضح طور بیان کوٚرمت، یتھہ پاٹھۍ اسۍ لل دیدِ یا شیخ العالم سندین شعرن یونیورسٹی ہندس شعبس منز کران چھہِ۔مثلا راہی چھہ کہوٹ کتابہِ منز شیخ العالم سندس "ژورس رٲوم تارس وتھ” شروکس اکھ پورہ دلچسپ ڈراما تعمیر کٔرتھ اکھ پریسایز معنی عطا کرنچ کوشش کران، بالکل یۅہے معنی تہ تمنے لفظن منز چھہ شفیع شوق پننس مضمونس منز یۅہے ڈراما پیش کران۔ (کمۍ کسندِ پیٹھ چھہ یہ ڈراما تلمت تہ ونن چھہ رژھ کھنڈ مشکل تکیاز کاشرین ادیبن چھہ حوالہ دین احساس کمتری باسان۔ شوق سند مضمون چھہ تاریخواری حسابہ گۅڈہ لیکھنہ آمت۔)

یوٚدوے یہ معنی بیان کرنک عمل درس و تدریس تہ سانہِ ذہنہ چہ علمی تشفی خاطرہ ضروری چھہ، مگر یہ چھہ بالاخر پریتھ قاری سند اکھ پنن ذاتی عمل آسان۔ شعرکۍ انسلاکات تہ ردعمل تہ امہ کہ تجربک دایرہ ہیکہ نہ پریتھ قاری سندِ خاطرہ لازمی طور ہہوے ٲستھ۔

بہ چھس نہ واریاہن شعرن واضح معنی قایم ہیکان کٔرتھ تکیازِ میہ چھیہ ہمیشہ زبان ٹھیک پاٹھۍ نہ زاننہ کنۍ اتھ کارس منز مشکل یوان۔ کاملنس شعرس منز ڈیکہ ٹیکک لفظی معنی یا آب واتنک لفظی معنی چھہ میانہِ خاطرہ ناممکن، مگر بہ ہیکہ ہمیشہ شعر کہ فراہم کردہ سیاق نش اکھ کلہم معنی پننہ خاطرہ اخذ کٔرتھ۔ شعرس واضح معنی دنہ خاطرہ چھہ یہ طے کرُن زِ لفظ "امس” کس کن چھہ اشارہ؟ یکس کن کِنہ یکہ وٲلس مدمقابلس؟ پریسایز معنی خاطرہ چھہِ یتھۍ ہوۍ سوال اہم آسان۔ دویمس مصرعس منز چھا متکلم (کامل) پانس "ژہ بادشاہ” ؤنتھ بیگم یا غلام بتھہِ دنچ سفارش کران کنہِ متکلم چھہ پننس اتھس منز موجود بادشاہ، بیگم یا غلام دنہ چہ چالہ پیٹھ پانس سیتۍ بحث کران؟ یکہ چھا مدمقابلن پتھر تروومت کِنہ متکلم چھہ تتھ یکس متعلق سوچان یُس تسندِ علمہ مطابق مد مقابل سسندس اتھس منز چھہ؟ امہ علاوہ شعرک tone کیا چھہ؟ یم سوال طے کرۍ تھے ہیکہ شعرک کانہہ واضح معنی بیان سپدتھ۔

بہ ییلہ کانہہ شعر پران چھس میانۍ نظر چھیہ نہ گۅڈنی تمہ کس معنی یس کن گژھان۔ گۅڈنی چھہِ امکۍ لفظ، تمو سیتۍ تعمیر کرنہ آمتین پیکرن، تشبیہن، استعارن تہ موسیقی کن گژھان۔ تمہ پتہ امہ کس اظہار کس نوعتس کن۔ پوٚتس چھیہ تمہ شعرچ معنویت تہ کھلان۔ کامل سند شعر چھہ نہ امہ کہ معنی کہ لحاظہ اہم بلکہ امہ کہ غیر روایتی اظہارہ کنۍ۔ اتھ منز چھہ تاسک اکھ رومانچک ڈراما پیش کرنہ آمت یُس زن غزلس منز عام طور میلان چھہ نہ، دوٚیم یہ زِ امیک مضمون (موضوع) تہِ چھہ غزلہ کہ روایتی مضمونو نش الگ تہ غیر روایتی۔ یمہ غزلک یہ مقطع چھہ سہ ہیکون کامل سندین بہترین غزلن منز شمار کٔرتھ۔ امہ غزلک اکھ امتیاز چھہ یہ تہِ زِ یہ چھہ کامل سندین تمن غزلن منز شامل یمن منز متحرک الاخر ردیف ورتاونہ آمت چھہ۔ یہ اوس نہ فارسی وزنن ہندس اثرس تل کاشرس غزل منز ورتاونہ یوان۔ کاملن کھول اتھ دسلابہ کرتھ مزید امکانن ہند بر۔

ترین لفظن ہنز داستان

ییلہ میہ امین کامل سنز نٔو شعرہ سۅمبرن تیار کٔر، ٲخرس پیٹھ رود سوال امہ کہ ناوک۔ کامل صابن اوس نہ کانہہ ناو دیتمت، تکیازِ تمۍ ٲس نہ اتھ پانہ کانہہ کتابی شکل دژمژ۔ ییتہ ییتہ میہ یا تس کانہہ چیز اتھہِ آو بہ رودس ٹایپ کران۔ کتابہِ منز شامل شروعات چہ نظمہ یم 1970 دوران لیکھنہ آسہ آمژہ تہ نیب رسالس منز آسہ تمنے دۅہن چھپیمژہ، آسہ نہ کنہِ کتابہِ مںز شامل حالانکہ "پدس پود ژھاے” ٲس تمنے دۅہن چھپیمژ۔ تتھ منز ہیکہ ہن تم شامل گژھتھ۔ تم نظمہ یمن منز قصیدہ تہ چھہ کرِ میۍ اتھ کتابہِ منز شامل۔

بہرحال، پوتس اوس سوال کتابہِ ہندِ ناوک۔ کامل صابس پرژھنہ بجایہ خبر کیازِ لوگس بہ پانے سوچنہِ۔ مگر سیتی سوچم نہ کتاب چھیہ تسنز ناو تہِ تھاویس سے، ترتیب دنہ سیتۍ کیا گوو۔ میہ چھہِ یاد تمۍ سندۍ لفظ ییلہ میہ تس پرژھ۔ دوپن "تھاوس کینژھا”۔ میہ اوس گۅڈے ژیونمت زِ کامل اوس پننہِ شعری شخصیژ نش اوت تام الگ تہ واریاہس حدس تام بےنیاز تہ بے تعلق سپدمت۔ یہ کتاب اوسس بہ پننی شوقہ تیار کران۔

میہ آیہ امۍ سنزن شعرہ سۅمبرنن ہندۍ ناو برونہہ کن۔ اکھ "مس ملر” ترٲوتھ یۅس اکھ ابتدایی کوشش ٲس، وچھ میہ زِ امۍ چھہِ تمام کتابن ہندۍ ناو ترین لفظن پیٹھ مشتمل کرۍ متۍ۔ یہند ناول "گٹہِ منز گاش” چھہ تریہ لفظ، منزم لفظ، لاحقہ’منز’ چھہ دۅن اندن ہندین لفظن منز رشتہ قایم کران۔ امی وقتچ بیاکھ کتاب "کتھہِ منز کتھ” تہِ چھہِ تریہ لفظ تہ یمن درمیان تہِ چھہ یتھے تعلق۔ امہ پتے یۅس کتاب برونہہ کن آیہ، سۅ ٲس یہنز دویم شعرہ سۅمبرن "لوہ تہ پروہ”۔ امہ کتابہِ کور کامل کاشرِ شاعری ہنزن توانا آوازن منز شامل۔ امیک ناو تہِ چھہ ترین لفظن پیٹھ مشتمل۔ اتھ منز چھہ منزم لفظ، حرف اتصال۔

شعرہ سۅمبرنہ یم امۍ امہ پتہ پیش کرِ آسہ امۍ سندس نٔوس اسلوبس مزید مستحکم کران تہ امی نسبتہ چھہِ تمن ہندۍ ناو تہِ غیر روایتی۔ "بییہ سے پان” تہ "پدس پود ژھاے”، یم دوشوے ناو تہِ چھہِ ترین لفظن پیٹھ مشتمل، مگر یہندۍ منزیم لفظ چھہِ تکرار پیش کرنہ بدلہ ناون ہندv ارتقا تہ تنوعس کن اشارہ کران۔ اتھۍ چیزس سٔنتھ کور میہ فیصلہ زِ ناو گژھہِ ترین لفظن پیٹھ مشتمل آسن۔ ییژ ہن ٲس طے، مگر کیا؟ تہِ طے کرُن اوس مشکل، تکیازِ یہ شاعری اوسس بہ مرتب ضرور کران مگر یہ ٲس نہ میانۍ شاعری۔ میہ آو خیال زِ پننۍ دخل اندازی کم کرنہ خاطرہ کرہ بہ ناو امۍ سندی کنہِ شعرہ منز اخذ۔ یہ اوسم معلوم زِ یہ آسہِ امۍ سنز ٲخری شعرہ سۅمبرن، امہ کنۍ زِ امۍ ٲس 1980 برونہے شاعری تقریبا تراومژ۔ امہ پتہ چھیہ امۍ اکا دکا غزلو علاوہ زہ ژور نظمہ لیچھمژہ یم کشیرِ ہندین تواریخی حالاتن متعلق چھیہ۔ امہ قسمہ چہ نظمہ لیکھنک دس تُل امی۔

yim_myeni_sokhan

یہ خیال تھٲوتھ زِ یہ آسہِ امۍ سنز ٲخری شعرہ سۅمبرن تہ پننہِ شعری شخصیژ متعلق امۍ سنزِ بے نیازی مد نظر آیہ میہ یم تریہ لفظ امۍ سندِ قصیدہ منزہ اتھۍ: "یم میانۍ سخن”۔ اوت تام ٲسۍ امۍ سنزن کتابن ہندۍ ناو اکھ پیکر، اکھ تصور تہ اکھ استعارہ برونہہ کن انان۔ میہ اون یمن لفظن ہندِ دسۍ یمن ہند لفظی پہلو برونہہ کن۔ یمن لفظن منز باسیہ میہ بے نیازی تہِ، طنز تہِ تہ دعوی تہِ۔ میہ ییلہ کامل صابس یہ ناو تجویز کور، سونچمت آسین زِ میون ناو تھاونک راز چھس کتھہ تام پاٹھۍ اتھہِ آمت، تہ شاید اتھۍ پیش نظر وونن "ٹھیک چھہ”۔ نتہ ما آسہِ ہس پانس تہِ یتھے ہیو کانہہ ناو ذہنس منز، کنہ اتھ منز تہِ ٲس تسنز بے نیازی۔

میہ باسان "یم میانۍ سخن” چھپاونہ دنس منز ما آسہِ ہے پوتس امس میہ ہوس نابکار نیچوۍ سنز خوشی مقصد!

امین کامل سند آبایی مکانہ

DSC03050

یہ چھہ امین کامل سند آبائی مکانہ تہ تم چھہِ ییتی زامتۍ تہ پریتھیمتۍ۔ اندازہ چھہ کرنہ یوان زِ یہ مکانہ آسہِ کم از کم ڈۅڈ ہتھ ؤری پرون۔ پننس لۅکچارس منز چھس بہ اور گومت۔ کھورِ طرفک زہ دارِ کٔرتھ کمرہ اوس بیٹھک، اتھ پیٹھہ کنہِ کس شیشہ دارِ پٹۍ وٲلس کمرس منز چھس بہ شونگمت۔ یم شیشہ دارِ چھیہ اتھ پتہ لگاونہ آمژہ۔ امہ برونہہ آسہ ہن اتھ تمے پنجرہ دارِ یم اتھ دچھنہِ طرفہ ونہِ تہِ چھیہ۔ برونہہ ٲسۍ دارین زہ پٹۍ آسان۔ بند پٹۍ یم اندر کن کھلان ٲسۍ تہ پنجرہ پٹۍ یم نیبر کن کھلان ٲسۍ۔ میہ چھہ یاد اکہ لٹہ کتھ تام کتھہِ پیٹھ روزوس بہ اتھ مکانس برونہہ کنہِ چہ کچھہِ تل ژورِ۔ سٲری ٲسۍ میہ گامۍ گامس ژھاران۔ اتھ کچھہِ تل ٲسۍ اکثر ہونۍ بیہان۔

DSC03057

امہ مکانہ چہ لرِ ہند فوٹو۔ کامل صٲبن کمرہ اوس پتمہ طرفہ دویمس پورس پیٹھ۔ بند دٲر یتھ اکس پٹس شیشہ چھہ بییس پٹس گلۍ یلے چھہِ۔ سہ اوس اکثر اتھ دارِ پیٹھ بیہان۔

اتھ مکانس چھہ تقریبا سورے پرونے۔ شیشہ داریو تہ چھتہ علاوہ چھہ سورے ڈۅڈ ہتھ ؤری پرون۔ ڈۅڈ ہتھ ؤری برونہہ آسہ ہن یتھۍ مکانہ اکا دکاہے آسان۔

کاملس روو کاپرن ہے ہے
دلے لامن تہِ لوب نہ لاس حمد

امین کامل سنز اکھ فارسی نظم ۔ اولین شعرہ نمونہ

muna with shaukat

 یتھ تصویرس منز چھہ میہ سیتۍ میانۍ زہ  پۅپھترۍ بٲے۔ منزس چھہ شوکت احمد یس کامل صٲبنہ اکس ہمشیرہ سند نیچو چھہ۔ یم چھہ کاپرنس نزدیک گوپال پور روزان۔ دچھنہ طرفہ چھہ ڈاکٹر امتیاز منصور یس کامل صٲبنہِ بییس ہمشیرہ سند نیچو چھہ۔ یم چھہ چھانہ پورِ روزان۔ شوکت احمدنۍ موج تہ مول چھہ کینہہ ؤری برونہہ گذریمتۍ۔ امتیاز منصورن مول تہِ گذریوو کینہہ ؤری برونہہ۔ کامل صٲبس چھہ یمو دۅیو بینیو علاوہ (یمو منزہ اکھ حیات چھیہ) زہ بٲے۔ یمو منزہ اکھ بڈشاہ نگرے روزان چھہ۔ بیاکھ برادر چھکھ کاپرنے روزان۔ ‌ژۅن ریتن اندر گذریہ یمن تریشونی بارنین ہنزہ زنانہ۔ کامل صٲب چھہ یمن سارنے زیٹھ۔ ماجہ ہندس مرنس پیٹھ پیوو میہ یمن تمام جاین تعزیتس گژھن۔ گوپال پور تہِ ووتس، زندگی منز گۅڈنچہ لٹہِ۔ شاید اتھۍ کن وچھتھ دیت میہ شوکت صٲبن نیرن وزِ اکھ سیٹھا مۅلل چیز یتھ تسند بڈۍ بب احمد اللہ حکیم (عرف بوڈ حکیم) تہ تسند بب حکیم ٭٭ رٲچھ ٲسۍ کرمژ۔ ٲخرس ووت یہ شوکت احمدس نش۔ یہ مۅلل چیز چھہ بۅنہ کنہِ پیش۔ یہ چھہ کامل صٲبنۍ اکھ فارسی نظم یوس تمو امۍ سے بڈس حکیمس (عمہ حکیم) سوزمژ ٲس۔ میانہِ خیالہ چھہ یہ کامل صٲبنہِ شاعری ہند اولین دستیاب نمونہ — مگر فارسی پاٹھۍ۔

kamil farsi poem

اے مسیح این زمان و اے حکیم ارجمند
از دم تو ہر کسی بسیار گشت از بہرمند
بر در تو بہر درماں آمدیم از کاپرن
این چہ بوالعجبی است کردی دل ما را دردمند
یک گناہ بے پناہ بر خود روا کردندہاں
آنکہ تشہیر دم عیسی بہ عالم کردہ اند
آتشی در زیر پا دارند عاشق بہر دوست
این ندانند مگر آنہا کہ خود ہم سوختند
تو چہ دانی لذت زہر کہ نوشد این غریق
می خوری در بستی گوپال پورہ شہدو قند

غریق کاشیمری

شوکت احمدن ونن چھہ ز‏ خط اوس کامل صٲبن کالجس دوران لیوکھمت۔ کامل صٲب چھہ اکس جایہ لیکھان زِ تسند مول اوس علاج خاطرہ تس امس حکیمس نش کالج گژھنہ برونہہ نوان۔ اگر تتھ کن گژھو تیلہ چھہ یہ کامل صٲبنہِ کالج اژنہ برونہم چیز۔ کامل صٲبن بابہ صٲب گذرییہ 1939 منز ییلہ تم کالج کس گۅڈنکس ؤریس منز ٲسۍ۔ ممکن چھہ یہ ما آسہِ تمی ؤریک۔ بہرحال تحقیق چھہ جاری۔ حکیم ٭٭ سندس گرس منز کور یمو پتہ رشتہ۔ کامل صٲبن گرہ کوتاہ چھہ امس حکیمس نش متاثر اوسمت، سہ چھہ یتھ نظمہِ منز ظاہر۔ امۍ حکیمن چھیہ کینہہ مسودہ طبس متعلق فارسی پاٹھۍ پتھ کن تراوۍ متۍ۔

میہ ہوو یہ نظم کامل صٲبس۔ واریاہس کالس رود سہ اتھ وچھان، تمہ پتہ زن نہ پہچوننے تہ دیتن واپس۔ پرژھمس یہ کر سا چھتھ ژیہ لیوکھمت۔ دوپن تہِ کس چھہ وۅنۍ یاد۔ دوپمس شوکت اوس ونان یہ چھہ یمو کالجس دروان لیوکھمت۔ تورہ دوپن خبر آسیم۔ 1939 منز اوس کامل صٲب 15 وہُر۔ کامل صٲب اوس یمن دوہن غریق تخلص کران۔

تۅہہ نش ما کٲنسہِ جواب؟

"بٲتن الگ الگ تاریخ آسن چھہ نہ ضروری تکیازِ شاعری چھیہ نہ تاریخواری مطابق
مۅلۅن سپدان۔ وۅنۍ گوو فروعی معاملہ ؤنراونس چھہِ کم کاسہِ مدد کران۔”
— امین کامل، سرنامہ ‘یم میانۍ سۅخن’

"شاعری چھیہ دورن منز لیکھنہ یوان، دۅہن تہ ؤرین منز نہ۔ مگر یہ تہِ گژھہِ
یاد تھاوُن زِ داہ ؤری تہِ ہیکہِ اکھ دور ٲستھ، خاص کر تیزی سان
بدلونس وقتس منز۔”
— منیب الرحمن

شفیع شوقن لیوکھ کاشرِ ادبک تواریخ یُس اکھ بوڈ کارنامہ چھہ۔ میہ چھہ امیک گۅڈنیک ایڈیشن وچھمت یتھ منز واریاہ خٲمیہ آسہ۔ تنہ پیٹھہ آے اتھ زہ تریہ ایڈیشن تہ میہ چھیہ وۅمید گۅڈنکہ ایڈیشن چہ ساریۍ حٲمیہ آسن درو سپزمژہ تکیازِ شوقس ٲس پانہ تمن خٲمین پیٹھ نظر۔  امہ تواریخ علاوہ چھیہ ضرورت زِ کاشرِ ادبہ کس جدید دورس پیٹھ، یُس 1960 پیٹھہ 1980 تام جاری رود، ییہ تواریخی کٲم کرنہ۔ یہ کٲم گوژھ یونیورسٹی ہند کانہہ طالب علم انجام دین۔ یہ ہیکہِ پی ایچ ڈی یک تہِ موضوع بٔنتھ۔ 

کمۍ کیا لیوکھ تہ کر لیوکھ، پتھ کُن لیکھۍ متین چیزن کر تہ کٲژا تبدیلی آیہ کرنہ یمن کتھن پیٹھ گوژھ تحقیق سپدن۔ ادبچ روایت چھیہ نہ ٹی ایس ایلیٹ، جیرالڈ مینلی ہاپکنز سنزہ کتھہ چکاونہ سیتۍ قایم گژھان، نہ چھیہ سۅ خالص کتابہ چھپاونہ سیتۍ قایم گژھان یوت تام نہ اتھ تمام کارکردگی اندۍ اندۍ اکھ ادبی کلچر کھڑا گژھہ،ِ یوت تام نہ یمن چیزن پیٹھ کتھ گژھہِ۔ کتھ چھہ نہ مطلب صرف تجزیہ تہ تنقیدی مضمون بلکہ لیکھن والین، تہنزِ زندگی، تہنزن کتابن، تہندس کلامس متعلق  پریتھ کونہ کتھ سپدِِ۔

سانین بزرگ ادیبن چھہِ ہمیشہ پننین چیزن غلط سنہ تلہ کنہِ دینک عادت اوسمت۔ کلیات مہجورس منز چھہ واریاہن چیز ن غلط سنہ دِتھ، دینا ناتھ نادم سنزِ کتابہِ منز چھہ واریاہن چیزن ٲنی مٲنی سنہ دِتھ۔ تس چھہ نہ یہِ تہ یاد روزان زِ امہ برونہہ ہے میہ اتھۍ چیزس اکھ سنہ دیت، از کتھہ پاٹھۍ دمس بیاکھ سنہ۔ رحمن راہی یس اوس عادت یہ زِ سہ یُس تہ چیز کنہِ رسالس سوزان اوس تتھ اوس شیہ ؤری، داہ ؤری پرون سنہ تلہ کنہِ دتھ تھاوان۔ زن اوس سہ پنن کلام دہن ؤرین پتھ تھٲوتھ پرانہِ شرابکۍ پاٹھۍ مارکس منز کڈان۔ یہ اوس سہ اکھ سوچتھ سمجتھ  گپلہ کران۔ امین کامل، مظفر عازم ہوین شاعرن اوس نہ یہ مسلے تکیازِ یم ٲسۍ سیتی کتابہ چھپاوان۔ کاملن چھپاوِ 1972 تام ژور شعرہ سۅمبرنہ، مظفر عازمن تہ چھپاوِ 1974 تام زہ سۅمبرنہ، مگر باقی شاعر رودۍ کلامہ پتھ کن تھاوان۔ وجہ اوس صاف یتھ پیٹھ بییہ کنہِ ساعتہ کتھ گژھہِ۔

نادم، فراق تہ راہی رودۍ گوش دوان حالانکہ کلچرل اکاڈمی ٲس یہند کلام چھپاونہ خاطرہ ہمیشہ تیار۔ ٲخرس پیٹھ نیہ یمو کنی کتابا چھپٲوتھ، یمن منز چیزن سنہ سیتۍ سیتۍ لیکھکھ چھہِ،  یم اکثر غلط چھہِ۔ یہند یہ وطیرہ وچھتھ ژٔٹ کاملن سلی کتھ۔ تمۍ چھپٲو نہ 1972 پتہ کانہہ کتاب بلکہ سپد سہ 1980 پتہ کاشرِ ادبی ماحول تہ کشیرِ ہندِ ماحولہ نش یوت بدظۅن زِ تمۍ کور شاعری ہند کارخانے بند۔ صرف لیچھن تم خاص نظمہ مثلا تٲے نامہ، حمد تہ لڈی شاہ بیترِ یمن منز تمۍ دراصل اتھ صورت حالس پیٹھ افسوس ظاہر کورمت چھہ۔ اکہ قسمکۍ مرثی۔ ییلہ کامل  2001 منز امریکہ کس چکرس پیٹھ آو اتی نیو میہ تسند سورے کلام تہ کورم جمع کتابہ ہندس صورتس منز۔ نیب رسالہ منزہ تہِ کوڈم قصیدہ تہ باقی نظمہ یم 1972 برونہہ چھپیمتۍ ٲسۍ مگر کاملس اوس نہ کنہِ کتابہ منز شامل کرنک موقعہ میولمت۔ امۍ سنزِ عدم دلچسپی کنۍ لگۍ اتھ کتابہ چھپاونس پانژھ شیہ ؤری۔ تہِ ٲس نہ تس وۅنۍ یہ کلام چھپاونس منز دلچسپی۔

rah

کامل چھہ کاشر ادب رسالس 1967 منز پنن تازہ غزل بحثہ خاطرہ سوزان:

بہار پوک نہ اگر چانہِ ترایہ گرایہ میہ کیا
گلالہ داغ جگر ہیتھ چھہ جایہ جایہ میہ کیا

راہی تہِ چھہ غزل سوزان تہ اتھ تلہ کنہِ لیکھان 1958۔ دہہِ وہرۍ پرون یہ غزل چھپاونک کیا مقصد چھہ اوسمت؟ دہن ؤرین اوس نا امۍ کانہہ نوو غزل وونمت؟ کنہِ یہ اوس تیتھ زبردست غزل یس نہ اگر چھپہِ ہے تہ نقصان گژھہِ ہے۔ وچھو غزل کیا اوس یُس دہہ وہرۍ چھپاون ضروری اوس:

بلۍ تہِ نو آو یہ رنگ حسن خیالس یارو
داغ تھاواں ہا وچھم سونت گلالس یارو

اگر یہ غزل پزۍ پاٹھۍ 1958 ہک اوس۔ راہی سند یہ 1967 منز چھپاوُن چھیہ مندچھ۔ 1967 منز اوس کاشرس منز تہِ دۅہ کتہِ کور ووتمت۔

کامل چھہ سوزان اتھۍ رسالس 1976 منز پننۍ زہ غزل:

سمے صدا چھہ ژہاں سنگرن جگر کس پتھ
گگن ہوا چھہ تلاں تارکن مژر کس پتھ

تہ

لکھ چھہِ پھیراں عجیب باوتھ ہیتھ
معنہ روستے حسیں عبارتھ ہیتھ

راہی تہ چھہ پننۍ نطم "آورن” سوزان ، تلہ کنہِ چھس تاریخ لیکھان 1970۔ شیہ وری پتھ۔
راہی یس کیازِ پننین چیزن تلہ کنہِ تاریخ لیکھنک ضرورت پیوان؟ دویم کتھ سہ کیازِ ہمیشہ شیہ ؤری، داہ ؤری پرون کلام چھپاونہ خاطرہ سوزان؟

یم چھیہ سوچنس لایق کتھہ۔ تۅہہ نش ما کٲنسہِ جواب؟

من ندانم فاعلاتن فاعلات

عروض چھہ آہنگ چہ ضابطہ بندی ہند ناو۔ یہ ضابطہ بندی چھیہ پریتھ عروضس منز، خاص کر منظم عروضن منز یمن منز عربی فارسی عروض شامل چھہ۔ یہ چھہ پوز زِ نمونہ وزن (مثلا مفاعلن فعلاتن مفاعلن فعلن) چھہِ مشینی مگر زبانۍ ہندۍ یم متحرک تہ زندہ لفظ یمن نمونن پیٹھ گنڈنہ یوان چھہِ، تم چھہِ امہِ بنیادی آہنگ علاوہ پنن تہِ اکھ زندہ لسانی آہنگ تھاوان یتھ منز لہجہ تہ معنیک تہِ برابر دخل آسان چھہ۔ مطلب یہ زِ مفاعلن فعلاتن مفاعلن فعلن وزن اگرچہ مشینی چھہ اتھ پیٹھ وننہ آمتۍ غزل گژھن نہ مشینی آسنۍ تکیازِ میکانیکی آہنگ کنے ٲستھ تہِ گژھن نہ تم اکی لسانی تہ معنوی آہنگکۍ آسنۍ۔ اگر یُتھ صورت حال برونہہ کن ییہِ سۅ چھیہ لازما شاعر سنز کمزوری، یۅس خاص کر تکرار یا تقلیدک نتیجہ آسان چھہ۔ مثلا اتھ وزنس پیٹھ وننہ آمتۍ کاملنۍ غزل گژھن باقی شاعرن ہندین غزلن نش تہنزِ مخصوص زبانۍ کنۍ اکۍ سے عروضی نمونس پیٹھ ٲستھ تہِ لسانی آہنگ کہ لحاظہ مختلف آسنۍ۔ مثالی وچھن ترایہ کنۍ گژھن اتھ وزنس پیٹھ کاملنۍ ونۍ متۍ غزل تہِ اکھ اکس نش مختلف لسانی آہنگ ہیتھ آسنۍ۔ یہ نکتہ کرون بنمیو ترییو غزلو سیتۍ واضح ۔ اکھ غزل چھہ امین کاملن تہ بیاکھ رفیق رازن تہ بیاکھ شفیع شوقن۔ 

سہ وق سہ رٲژ پہر ییلۍ جگر وہاں آسی
بدن یہ ماز چھنتھ کرنز ہیو مۅژاں آسی
یہ لر تہ کانہِ لگاں کیل ہۅ لر تہ اڈۍ جہ فنا
تہِ پوشہ پان پنن بسترس سناں آسی
(امین کامل)

یِتھے چھہِ باگہ یواں کس مژر تہ خاموشی
سراں چھہ زندہ زوے کُس قبر تہ خاموشی
ژۅپارۍ زنتہ یہ چونے نظارہ بییہ نہ کہنی
ژۅپارۍ زنتہ یہ میانی نظر تہ خاموشی
(رفیق راز)

گژھن تہ اوس تمس گوو گژھتھ سہ آو نہ زانہہ
سیٹھا زمانہ گژھتھ آوہ آو دراو نہ زانہہ
لبن زٔلس چھہ ژشاں مول اندرہ باچھہِ کلا
ہنیوو گٹہِ منزے وۅگہ ووبۍ پھبیاو نہ زانہہ
(شفیع شوق)

یمن ترین غزلن ہند لسانی آہنگ چھہ نہ اکۍ سے مشینی وزنس پیٹھ ٲستھ تہِ کنے۔ یمن غزلن ہند انفرادی لسانی آہنگ بناونس منز ییتہِ یہندس مخصوص لفظیاتس، لفظن تہ تمن ہنزن آوازن ہندس دروبستس تہ مخصوص لہجس دخل چھہ تتہِ چھہ کنہِ حدس تام اتھ منز ردیف قافیہ تہِ مدد گار سپدان۔ امہِ علاوہ وچھو شوق سندین شعرن منز واقعاتی فعلن ہند ورتاو تہ اتھ مقابلہ رفیق راز نین شعرن منز واقعاتی فعلن نش احتراز، تہ کامل سندین شعرن منز شرطیہ فعل۔ یم سٲری لسانی پہلو چھہِ شعرک مخصوص آہنگ تعمیر کرنس منز مدد کران۔ وۅنۍ وچھون کاملنے بیاکھ غزل یس اتھۍ مفاعلن فعلاتن مفاعلن فعلن کس وزنس پیٹھ وننہ چھہ آمت:

یہ نار کیتھ چھہ الہی شہر شہر چھہ دزاں
عقل گمژ چھیہ دہے دہ اگر مگر چھہ دزاں
دزاں چھہِ بام پیواں ژینۍ ہیواں الاو کٹھین
گرس گرس چھیہ پلاں ژھٹھ نفر نفر چھہ دزاں

امہِ غزلک لسانی آہنگ چھہ یک دم کاملنہِ پتمہِ غزلہ نش مختلف تہ یتھے پاٹھۍ راز تہ شوق نہِ غزلہ نش تہِ۔ نکتہ چھہ یہ زِ وزنچ مشینی نوعیت (یۅس پریتھ قسمہ کہ عروضچ بنیاد چھیہ) چھیہ نہ یتھین غزلن برونہہ کنہِ کانہہ معنی تھاوان۔ یتھین غزلن منز چھہِ مشینی وزنہ بجایہ یمن غزلن ہنز لفظیات، آوازن ہنز دروبست، معنیاتی فضا تہ لہجک آہنگ پرن والۍ سندس ذہنس آوراوان۔ مگر ییلہِ کانہہ شاعر یتھین غزلن ہنز محض تقلید کرنہِ بیہان چھہ، عروض کہ مشینی نوعیتک احساس پیدہ گژھن چھہ لازمی۔ یہ احساس چھہ تیلہِ تہِ سپدان ییلہِ اسۍ رسالن منز اکی لسانی آہنگکۍ تہ لہجکۍ غزل صفحہ پتہ صفحہ وچھان چھہِ۔ یہ احساس چھہ نہ عربی فارسی عروض سے سیتۍ مخصوص بلکہ ہیکہِ یہ کنہِ تہِ عروضس منز ممکن ٲستھ۔ اتھ چھہ نہ صرف عروض کس ورتاوس سیتۍ رشتہ بلکہ لفظیاتس تہ لہجس سیتۍ تہِ۔ مثالہِ پاٹھۍ نمون اسۍ کاملن بنم غزل یس فاعلاتن مفاعلن فعلن کس وزنس پیٹھ چھہ:

نندرِ اندر نندر خراب تہِ کر
با سکوں روز اضطراب تہِ کر
سونچہ سودرکۍ ملر تلکھ ہمراہ
شیچھ یہ باوی دلک حباب تہِ کر 

اتھۍ غزلس پیٹھ ییلہِ راہی ہیو شاعر پنن غزل نہ صرف وزنہ کنۍ تہ قافیہ کنۍ بلکہ لہجہ کنۍ تہِ تقلید کٔرتھ ونان چھہ، یک دم چھہ تکرارک احساس گژھان۔ اگر اتھ آہنگس ساری شاعر یتھے پاٹھۍ پتہ لگن یۅہے احساس گژھہِ عروض کس مشینی احساسس منز تبدیل۔ وچھوکھ راہینۍ شعر:

سودرہ تارس تراں سراب تہِ سر
ٹورۍ اسناہ کراں گلاب تہِ ہر
چانہِ جسمچ سبز سپار پٔرم
میانہِ روحک کرہن عذاب تہِ زر 

نہ صرف چھہ اتھ منز کاملنہِ غزلہ کہ بنیادی لہجک آہنگ برقرار تھاونہ آمت بلکہ چھہ قافیہ تہِ برقرار تھاونہ آمت۔ اتھ غزلس منز چھہ کاملنہِ بییہِ اکہ غزلک ول تہِ ورتاونہ آمت۔ یعنی دوگن قافیہ۔ وچھون سہ غزل تہِ۔

چشمے تلکھ اضطراب ہاوکھ
دم دتھ تہِ کوتاہ حباب تھاوکھ
ماگس اندر تے امار برادی
ژٹۍ ژٹۍ حریرس گلاب چھاوکھ 

میانہِ پیٹھمہِ بحثک مطلب چھہ یہ زِ جان شاعر سندس اتھس منز چھہ نہ عروضک مشینی پاس نظری یوان۔ سہ چھہ پننہِ لہجہ تہ لفظیات چہ انفرادیژ تہ تحرک سیتۍ عروضک سہ پاسے نظرن دور کران۔ کامل، راز تہ شوق سندین غزلن منز چھہ نہ وزنہ کس مشینی نمونس منز کانہہ انحراف کرنہ آمت۔ تمہِ وارے چھہ یمن تریشونی غزلن منز آہنگک تنوع میلان۔ شاعری ہندِ آہنگک تنوع ہیکہِ لسانی انفرادیژ تہ لسانی تنوع علاوہ زحافن ہندِ ذریعہ یا عروضی انحرافو سیتۍ تہِ پیدہ کرنہ یتھ۔ عربی فارسی عروضس منز چھہِ آہنگ زیٹھین ژھۅٹین ہیجلین ہنزِ اکہ خاص ترتیبہِ سیتۍ پیدہ کرنہ یا گنڈنہ یوان۔ لہذا یمن ہنز یہ ترتیب قایم تھاونۍ چھیہ امہِ عروضچ اولین ضرورت۔ تمن عروضن منز ییتہِ عروضچ (آہنگ پیدہ کرنچ) بنیاد ژھۅٹین زیٹھین ہیجلین ہندس ترتیبس پیٹھ چھیہ نہ، تمن منز اگر ہیجلۍ اورہ یور تہِ گژھن کانہہ فرق پییہ نہ۔ مگر یتھ عروضس منز زیٹھین ژھۅٹین ہیجلین ہنز خاص ترتیب ورتاونہ یوان آسہِ، سۅ برقرار تھاونۍ چھیہ ضروری۔ البتہ اکہِ خاص ترتیبہِ سیتۍ پیدہ کرنہ آمت آہنگ برقرار تھٲوتھ رکھہِ ڈلنس چھہِ زحافہ ورتاو ونان۔ یعنی کینژن جاین چھہ تنوع پیدہ کرنہ کہ غرضہ ترتیبہ منز تبدیلی کرنک اجازت۔ پریتھ کانہہ شاعر چھہ نہ آہنگن ہند یوت ماہر آسان زِ سہ کرِ نوۍ نوۍ زحافہ ایجاد۔ اوے چھہِ پریتھ بحرس تہ وزنس عروضی کتابن منز کینژن مخصوص زحافن ہنز نشاندہی وتھ ہاونہ خاطرہ کرنہ آمژ تاکہ مجبوریو، مقصدو علاوہ ییہِ مختلف زبانن ہندِ آہنگک تہِ خیال تھاونہ۔ زحافہ ورتاوہ سیتۍ چھہِ نہ صرف اکہ وزنہ پیٹھہ نوۍ وزن بناونہ یوان بلکہ چھہ اکۍ سے وزنس منز آہنگک تنوع تہِ پیدہ کرنہ یوان۔ امہِ قسمک زحافہ ورتاو چھہِ نہ سانۍ شاعر عروض نہ زاننہ کنۍ کٔرتھ ہیکان۔ یمن زحافہ تبدیلین ہند اجازت چھہ زیادہ تر عروض تہ ضربس تام محدود تاکہ وزنک کلہم آہنگ روزِ برقرار۔ مگر کینژن وزنن منز ہیکہِ امہ قسمچ تبدیلی باقی ارکانن منز تہِ سپدتھ تہ آہنگس پییہ نہ تنوع علاوہ کانہہ فرق۔ مثلا کاملن یہ شعر:

ڈیر چھی سخنن گمتۍ نیر تہ بیہہ آبس منز
فاعلاتن فاعلاتن فعلاتن فعلن
معنہ حرفن چھہ ہراں تیزاں چھیہ تیہہ آبس منز
فاعلاتن فعلاتن فاعلاتن فعلن

وچھو اتھ منز کتھہ پاٹھۍ چھہِ فاعلاتن تہ فعلاتن (بہ تحریک عین) آزادی سان اکھ اکہ سیتۍ بدلاونہ آمتۍ۔ امہ تبدیلی سیتۍ یودوے دۅن مصرعن ہندس آہنگس منز تنوع پیدہ گومت چھہ مگر کنہِ قسمک اختلاف یا بد آہنگی چھیہ نہ پیدہ گمژ۔ ضرورت چھیہ یہ زِ نہ صرف ین جایز زحافہ کھلہ پاٹھۍ ورتاونہ بلکہ گژھن تتھۍ انحراف تہِ کرنہ ینۍ یمن ہند اجازت روایتی عروضی اصول چھہ نہ دوان مگر یم یا تہ زبانۍ ہندِ مخصوص آہنگہ کنۍ یا کنہِ معنوی مجبوری تہ تنوع کہ غرضہ کنۍ مستحسن آسن۔ یژھہ تبدیلی کرنہ خاطرہ چھیہ دۅشونی عروضس تہ زبانۍ ہندس آہنگس پیٹھ نظر آسنۍ ضروری۔ شاید چھہ یتھنے انحرافن مدنظر "کاشر شاعری تہ وزنک صورت حال” مقالک مصنف ونان:

’’عربی فارسی عروضہ کس محض مشینی ظاہرس آویزہ روزنس چھہ نتیجہ نیران زِ اسۍ چھہِ بعضے رتین کیو بڈین شاعرن ہندۍ کینہہ شعر وچھتھ پریشان ہوۍ گژھان زِ تمن کُس تُل کرو یا میژ ہیمو؟‘‘ (ص ۵۳)

امہِ اقتباسہ پتے چھہ سہ کینژن شعرن ہنزہ مثالہ دوان یمن منز رسول میرن یہ شعر تہِ چھہ۔

شہمارۍ زلفو نال وولہم رود افسانے
وۅنۍ ونتہ کم افسانہ پرے بال مرایو

اگر یہ مفعول مفاعیل مفاعیل فعولن وزنس پیٹھ نمون، یہ چھہ نہ مشینی طور پورہ وتران بلکہ چھہ کینژن جاین پھٹان۔ مگر اتھ منز چھیہ نہ پھٹنہ باوجود کانہہ بد آہنگی محسوس سپدان۔ یمیک وجہ اکھ الگ بحث چھہ تہ ییتہِ نس ونو اسۍ زِ یہ شعر چھہ یتھ کتھہِ کن خوب اشارہ کران زِ رکھہِ ڈلن یا زحافہ ورتاون یا ایجاد کرن کتھہ پاٹھۍ ہیکہِ آہنگ کہ لحاظہ مستحسن ٲستھ۔ شعر پھٹنہ باوجود چھہ نہ آہنگ مجروح گژھان۔ کانہہ لفظ ہیکہِ نہ اورہ یور ڈلتھ۔ کانہہ تصحیح چھیہ نہ ممکن۔ یہ شعر چھہ لفظن ہنزِ چستی تہ بندشہِ ہنز بہترین مثال پیش کران۔ اتھ برعکس نیون راہی ین یہ شعر:

نہ ابتدا نہ پریتھنپا نہ انتہا باسی
وزکھ اگر ٹھینوہ روس زانہہ میہ ونۍ زِ کیا باسی

یمن دۅشونی مصرعن منز چھہ نہ وزنس منز کانہہ انحراف کرنہ آمت تہ نہ چھہ کانہہ زحافہ ورتاونہ آمت۔ مگر وزنہ کنۍ دۅشوے مصرعہ مشینی طور برابر ٲستھ تہِ ہیکون نہ گۅڈنیک مصرعہ دویمس مصرعس ہم آہنگ مٲنتھ۔ بلکہ چھہ دویم مصرعہ کنہِ حدس تام بد آہنگ، تکیازِ اتھ منز چھیہ گۅڈنکس مصرعس مقابلہ لفظن ہنز بھرمار۔ دویم وجہ یہ زِ گۅڈنکہِ مصرعک آہنگ قایم تھاونہ خاطرہ چھہ دویم مصرعہ سیٹھا وُژھہِ تہ تیز رفتاری سان پرُن پیوان ییلہ زن شعر امہِ جلدی ہند کانہہ معنوی مطالبہ چھہ نہ کران بلکہ چھہ یہ مصرعہ کنہِ تھکہ وراے پشہ پیٹھہ شین والنس یا بیگارۍ نکھہ والنس برابر۔ راہی نہِ امی غزلک بیاکھ شعر تہِ وچھون:

بہ چھس نہ ونہِ تہِ سۅ کنۍ شیچھ تسنز ہیکاں مۅلوتھ
ژہ کیا کرکھ اگر ابلیس خیر خواہ باسی

اتھ شعرس منز تہِ چھہ گۅڈنیک مصرعہ مشینی طور وزنس برابر ٲستھ دویمہِ مصرعہ کہ آہنگہ نش زیٹھان۔ یم مصرعہ تہِ چھہِ نہ مکمل طور ہم آہنگ۔ راہینۍ یم شعر چھہِ وزن مشینی طور ورتاونک بیاکھ پہلو پیش کران۔ یعنی شعرک لسانی آہنگ اوک طرف ترٲوتھ، وزنہ برابری کرنۍ۔ یمہِ قسمچ خالص وزنہ برابری یمن شعرن منز میلان چھیہ سۅ چھیہ نہ لسانی آہنگک رت نمونہ پیش کران۔ ممکن چھہ یہ آسہِ راہی سنز شعوری کوشش مگر یہ ہیکہِ اظہارس یعنی لفظ وبیانس پیٹھ دسترس نہ آسنک نتیجہ تہِ ٲستھ۔ یوت تام نہ شاعرس یہ دسترس حاصل سپدِ توت تام چھہ سہ عروض کہ جبرکۍ بداد دوان۔ یمہِ ساتہ مولانا رومی ونان چھہ : شعر می گویم بہ از قند و نبات/من ندانم فاعلاتن فاعلات سہ چھہ اتھۍ مشینی مزازس کن اشارہ کران۔ مولانا چھہ نہ عروضکۍ بداد دوان یا امہِ کہ جبرچ کتھ کران بلکہ چھہ سہ یہ ونان زِ بہ چھس قندہ تہ نباتکۍ پاٹھۍ میٹھۍ شعر ونان یعنی پر آہنگ شعر۔ سہ چھہ نہ یم میٹھۍ شعر عروض نیبر نیرتھ یا عروض کین اصولن تجاوز کٔرتھ ونان بلکہ چھہ مولاناہن عربی فارسی عروض پریتھ پابندی سان ورتومت۔ پابندی سانے اوت نہ بلکہ جایز زحافہ ورتٲوتھ تنوع سان تہِ۔ تسند مقصد چھہ یہ زِ سہ چھہ نہ فاعلاتن فاعلاتنچ مشینی ضابطہ بندی یا وزنہ برابری نظرِ تل تھٲوتھ شعر ونان۔ یعنی سہ چھہ نہ زبردستی کٔرتھ لفظن منز وزنہ برابری کران۔ اگر تہِ کرنہ ییہِ تیلہ گژھن بد آہنگ شعر موزون یمن ہنز مثال اسہِ راہی سندین پیٹھمین شعرن منز وچھ۔ "من ندانم” گوو نہ "بہ زانہ نہ”۔ سہ گوو لفظی معنی، مگر یہ چھہ شعر۔ مولانا اوس وارہ کارہ عروض زانان تہ ورتاوان۔ امیک مطلب گوو سہ چھہ لفظن ہندس میچھرس یعنی لسانی آہنگس اہمیت دوان، فاعلاتن فاعلات کس ژھرس مشینی گردانس نہ۔ راہینۍ شعر اگر وزنہ کس مشینی گردانس پیٹھ پورہ وتران چھہِ، تاہم چھہِ نہ تم زبانۍ تہ آہنگک میچھر پیدہ کٔرتھ ہیکان یمچ کتھ مولانا پیٹھمس شعرس منز کران چھہ۔

وادس منز گلریز رسالس متعلق اکھ لۅکٹ بحث

واد رسالس منز چھہ گلریز رسالس متعلق اکھ لۅکٹ بحث سپدمت، یمیک ذکر ضروری چھہ۔ عزیز حاجنی یس چھہ پروفیسر محی الدین حاجنی ین وونمت زِ "گلریز” رسالہ اوس تمی کوڈمت تہ پانس سیتۍ ٲسن مرزا عارف تہ امین کامل تھاوۍ متۍ۔ امہ کہ بند گژھنک وجہ اوس یمن دۅن درمیان نفہکۍ پونسہ باگراونک جھگڑہ، یتھ پروفیسر حاجنی ین فیصلہ کٔرتھ دژاو مگر یمو دریو مون نہ۔ یم کتھہ چھیہ عزیز حاجنی ین شیرازس منز چھپیمتس پننس اکس مضمونس منز ونہِ مژہ۔ تمیک اقتباس چھہ:

” گلریز رسالہ چھپییوو کاشرِ زبانۍ منز یہنزوے (مطلب پروفیسر محی الدین حاجنی سنزو) کوششو سیتۍ تہ توتام رود یہ باقاعدہ پاٹھۍ چھپان یوت تام یم (مطلب پروفیسر محی الدین حاجنی) اتھ سیتۍ وابستہ رودۍ۔ ۔۔ یہ رسالہ چلاونس منز ٲسۍ یمن مرزا غلام حسن بیگ عارف تہ امین کامل تہِ سیتۍ ۔۔۔ یہ رسالہ بند گژھنک اصلی وجہ اوس سہ فتنہ یُس کامل صابس تہ عارف صابس نفہک پونسہ بٲگراونس پیٹھ ووتھ۔ تہ یہ فتنہ انزراونہ خاطرہ دژاو میہ (مطلب پروفیسر محی الدین حاجنی) عاقلی فیصلہ زِ گلریز کہ آمدنی ہندۍ ہریمانہ پٲنسہ گژھن محض امہ رسالہ چہ ترقی خاطرہ تھاونہ ینۍ۔” (شیرازہ جنوری فروری 1988)

اتھ پیٹھ سوز کاملن وادس اکھ خط یس واد شمارہ 12 کس دویمس حصس منز چھپیوو۔ اتھ منز ٲسۍ کاملن حاجنی سند یہ بیان غلط ثابت کرنہ خاطرہ یم حقایق پیش کرۍ متۍ:

(1)  گلریزک گۅڈنیک شمارہ دراو نومبر 1952 ہس منز۔ اتھ چھہ بانی مرزا عارف تہ ترتیب امین کامل تہ پرنٹرپبلشر
محمد صدیق کبروی ٹاکارہ پاٹھۍ چھپتھ۔
(2) فروری 1953 ہس اندر ییلہ کامل امہ ادارہ نش الگ سپد (کامل آو ژکہ سبکدوش کرنہ)، مرزا عارفن بناوۍ محی الدین حاجنی تہ عبدالحق برق کامل سنزِ جایہ ترتیب کار۔
(3) اگر یہ رسالہ محی الدین حاجنی یُن اوس تہ امۍ مرزا عارف تہ امین کامل پانس سیتۍ رٹۍ متۍ ٲسۍ تم کتھہ پاٹھۍ ٲسۍ رسالک نفع بٲگران تہ محی الدین حاجنی اوسکھ فیصلہ دوان کٔرتھ۔

اوت تام اوس صحیح زِ عزیز حاجنی ین لیوکھ تہِ یہ تمۍ محی الدین حاجنی یس نش بوز، مگر کامل سند جواب پٔرتھ پزِ ہے تس اکس ادیب سندۍ پاٹھۍ یمن کتھن متعلق تحقیق کرُن، نزِ واپسی جوابس منز یہ لیکھن: "(کامل) چھہ کافی ادبی سفر طے کرنہ باوجود تہِ اپرِ کس حدس تام جبلت خود نمایی ہند شکار۔ یمہ کتھہ ونہِ میہ حاجنی صٲبن مگر کامل صٲب چھہِ دپان زِ یہ چھہ سراسر اپُز! خیر زبان درازی گوو نہ جان۔”

جبلت خود نمایی ہند کس نہ چھہ شکار؟ مگر گلریز رسالہ کین متعلقہ شمارن ہندۍ گۅڈہ ورق چھہ پیش تاکہ محی الدین حاجنی سنز غلط بیانی گژھہِ ننۍ تہ عزیز حاجنی یس گژھہِ احساس ز یژھہ کتھہ چھیہ نہ جذباتن بلکہ تحقیقک تقاضہ کران۔

gul1

یہ چھہ گۅڈنیک شمارہ، یتھ مرزا عارف بانی لیکھتھ چھہ، محی الدین حاجنی سند چھہ نہ کانہہ ناو نشانے، نہ اداریہس منز تہ نہ مندرجاتن منز۔

gul 2

یہ چھہ پٍنژم شمارہ۔ کامل دراو تریمہ شمارہ پتہ، مرزا عارفن رٹۍ محی الدین حاجنی تہ
عبدالحق برق پانس سیتۍ۔

Gul 3

تمہ پتہ 1955 ہس منز بند گژھتھ، آو 1961 منز دوبارہ کڈنہ، مرزا عارفن رٹۍ غلام نبی خیال تہ مرزا حبیب الحسن پانس سیتۍ۔

عزیز حاجنی صابا، وونۍ ما اوس گلریز رسالہ محی الدین حاجنی ین کوڈمت؟

"روت موکل” — زندگی ہنز وۅمید

anin_kamil
روت موکل ۔۔ امین کامل

کۅ کتھ ہیتھ آو شبنم راتھ شامس
قدم سوتۍ پاٹھۍ تروون پوشہ وارے
اژتھ پوشن کنن منز راتۍ راتس
اپز اوش رود ہاراں تولہ وارے
مٹنۍ گورا ملا زن خانقیشا
ونان اوسکھ چھہ دنیا دار فانی
فریبا بوڈ یتیک اسنا تہ عیشا
رِوانی یوت اژن نیرن رِوانی
اتھۍ اندر آفتابن تروو پرتو
اچھن گاشا اونن کوسن دلن مل
عناصرہ شبنمس ڈجہ تے کڈن دو
فنا گوو گاش ڈیشتھ روت موکل
ژھنس کھنگالہ پوشو مس ملوریو
کورس ژرِ پوپ شریو زن پوشہ ٹوریو

یہ چھیہ امین کامل سنز اکھ ابتدایی نظم یۅس 1953 ہس آس پاس وننہ آمژ چھیہ تہ تسنزِ "مس ملر” کتابہِ منز شامل چھیہ۔ امہِ نظمہِ ہند تعارف سپد میہ گۅڈنچہ لٹہِ پروفیسر جیالال کول سنزِ سٹڈیز ان کشمیری کتابہِ منز تسندِ انگریزی ترجمہ کہ ذریعہ یس امہِ نظمہِ ہند سیٹھا قابل ترجمہ چھہ۔ کول چھہ امہِ نظمہِ ہنز خصوصیت استعارک نویر ونان ۔ترقی پسند تحریکہِ یمن چیزن ہند ڈول ووے تمن منز ٲس پگہچ وۅمید تہِ۔ یہ نظم چھیہ ٹاکارہ پاٹھۍ ترقی پسندی ہندس اثرس تل وننہ آمژ، مگر زندگی ہنز وۅمید تہ تسلسل یُس امیک مرکزی خیال چھہ، چھیہ انسانی وجودس تہ ادبی اظہارن منز ہمیشہ موجود ٲسمژ۔

ترقی پسند تحریکہِ برونہہ ٲس یہ وۅمید مذہب تہ ثقافتی روایژن سیتۍ وابستہ۔ امہِ تحریکہِ کٔر یہ وۅمید سماجی برابری ہندس فلسفس سیتۍ وابستہ یتھ منز عوام تبدیلی ہند مرکز بنیوو۔ جدیدیتکۍ فلسفن کٔر یہ وۅمید کلاسیکل کین مذہبی تہ ثقافتی کیو ترقی پسندی کین سماجی تہ اجتماعی پہلوون برعکس انسانہ سندس انفرادی پہلووس سیتۍ وابستہ۔ ادیب سنز وۅمید تہِ بنییہ تخلیقی عملہِ ہنز وۅمید تہ یہ سپز وۅنۍ خۅد ادب پارس سیتۍ وابستہ۔ مگر وۅمید روز ہمیشہ ادبس پتہ کنہِ کارفرما تکیازِ وۅمید چھہ اکھ بنیادی انسانی جذبہ تہ امہِ کنۍ ین یہ تہ پژھہ ہشہ باقی نظمہ ہمیشہ پرنہ یم زندگی سیلیبریٹ کران چھیہ۔

زندگی ہنز موتس پیٹھ فتح تہ زندگی ہندس تسلسلس پیٹھ وننہ آمژ یہ نظم چھیہ سانیٹ فارمہ منز۔ شبنم شخصٲوتھ تہ کۅ کتھہِ ہند ایجنٹ بنٲوتھ پیش کرُن چھیہ یمہ نظمہِ ہنز اکھ خوبصورتی تہ نویر۔ شاعری چھیہ ہمیشہ معمولس تہ معمولی یس نیبر نیرنچ کوشش کران یۅس یمہِ نظمہِ ہندس استعارس منز ظاہر چھیہ۔

کامل سندۍ پیکر چھہِ نہ خالص نمایشی نوعیتکۍ، یم چھہ موضوع کہ لحاظہ معنی خیز آسان۔ یتھ نظمہِ منز چھہ پوشن ہندین کنن منز شبنمک اژن گورن تہ ملن ہندس خالص وعظانہ تہ عملہِ روس درسس کن اشارہ کران۔ اگر پوش مندر یا خانقاہ مانون، شبنم چھہ یمن اندر وعظ پرن وول گور یا ملہ۔ آفتاب چھہ استعاراتی طور روحانی معنی رٹان، تہ امیک کانہہ وعظ پرنہ ورٲے خالص پرتو سیتۍ دلن ہنز کدورت تہ مل دور کرن چھہ گورن تہ ملن ہندس وعظس مقابلہ اکھ عملی روحانی واقع۔ ملہ تہ گور چھہِ روحانی گٹس اندرے پریتھان۔ ظہورک آفتاب چھہ نہ اچھن تہ دلن گاشرٲوتھ یمن ہندِ خاطرہ کانہہ گنجایش تھاوان۔ یتھ نظمہِ چھہ ترقی پسندی کھوتہ زیادہ کامل سندس اعتقادی رحجانس سیتۍ واٹھ لگان۔

یہ نظم چھیہ صوتی طور تہِ آوازن ہند اکھ ہم آہنگ سلسلہ قایم کران۔ نظمہ منز دیو یمن آوازن کن خاص دھیان: /و/، /س/، /ش/، /ت/، /ر/ ، /ن/۔

__

نظمہِ ہنز معنوی تہہ داری سمجنہ خاطرہ چھہِ یم کینہہ نکتہ کارآمد

۔ جاے، پوشہ وٲر
۔ کردار: شبنم (روت موکل)، پوش، آفتاب، پوشہ ٹورۍ
۔ وقت: شام/راتھ، یعنی اکہ دۅہہ کس اندس تہ دویمہ دۅہہ کس آغازس درمیان وقفہ، یتھ درمیان وقت معطل چھہ سپدان تہ امہِ کس تسلسلس چھہ ٹکھ لگان
۔ پوشہ وٲر دنیاہک، زندگی ہند استعارہ
۔ آفتاب: حقیقت، اچھن گاش انان، شک کاسان، دلن مل دور کران
۔ روانی یوت اژن نیرُن روانی۔ اتھ مقابلہ کھنگالہ تہ ژرِ پوپ۔ اکھ ڈرامایی صورت حال۔ دۅن حقیقتن درمیان اکھ تصادم۔
– گۅڈنکین ژۅن مصرعن منز چھہ پوشہ وارِ ہند فطری (نیچرل) دنیا پیش یوان کرنہ۔ امہ پتہ یم ژور مصرعہ یوان چھہِ تمن منز چھہ مثال دِتھ انسانی دنیا متعارف کرنہ یوان، تہ امہ پتہ یتہ والین ژۅن مصرعن منز بییہ وسعت دتھ فطری دنیا (شریو تہ پوشہ ٹوریو تتھہ ٹاٹھۍ انۍ متۍ زِ یہ ونن چھہ مشکل زِ ژرِ پوپ کورا شریو کنہ پوشہ ٹوریو۔)واپس اننہ یوان تہ ٲخری دۅن مصرعن منز چھہ فطری دنیاہس تہ انسانی دنیاہس میل کرنہ آمت (شرۍ تہ پوش)۔

__

مس ملر کہ وقتہ اوس کامل باقی شاعرن ہندۍ پاٹھۍ اقبال سندس اثرس تل۔  یتھ نظمہِ پتہ کنہِ گژھہِ علامہ اقبال سنز یہ نظم پرنۍ۔  کامل سنز نظم چھیہ امہ کے آزاد ترجمہ باسان، مگر کامل سنزِ نظمہِ منز چھہ اتھ خیالس موضوعی تہ تکنیکی طور ہریر واضح۔

زندگی

شبی زار نالید ابرِ بہار
کایں زندگی گریۂ پیہم است
درخشید برقِ سبک سیر و گفت
خطا کردۂٖ، خندۂ یک دم است
ندانم بہ گلشن کہ برد ایں خبر
سخن ہا میانِ گل و شبنم است

__

محمد یوسف ٹینگ چھہ غلام نبی فراق سنزِ "صدا سمندر” کتابہِ ہندس دیباچس منز اکس جایہ ونان زِ فراقن لیچھہ "دسلابہ چہ کینہہ اولین نظمہ۔ مثلا یتھ مجموعس منز موجود لوکٹ نظم ‘صبح’ یۅسہ 1957 منز تھنہ پیمژ چھیہ۔ یہ چھیہ سانیٹ کس فارمس منز تہ شاید اوس امہ برونہہ صرف دیناناتھ نادمن یتھ ہیو چیز کاشرۍ پاٹھۍ لیوکھمت۔” گوڈنی نادم سندس سانیٹس ‘یتھ ہیو چیز’ ونن چھہ عجیبے باسان۔ دویم کتھ چھیہ کاشرِ ادبہ کس امس بالغ نظر نقادس گژھ مۅچھہ برابر لیکھنہ آمتس کاشرس ادبس پیٹھ میانہِ کھوتہ ژر نظر آسنۍ۔ کامل سند پیٹھم سانیٹ چھہ فراق سنز ‘صبح’ نظمہِ برونہہ 4 وری وننہ آمت تہ 1955 منز شایع گمژِ ‘مس ملر’ کتابہِ منز شامل۔ اہم کتھ چھیہ نہ یہ زِ کاملن چھہ فراقس برونہہ سانیٹ وونمت بلکہ یہ زِ فراقن چھیہ کاملن ‘روت موکل’ سانیٹ پرۍ تھے تمی طرزہ تہ مفہومہ پننۍ نظم ‘صبح’ ونۍ مژ۔ رات تمہِ پتہ آفتاب پھۅلن، شبنم، پوشہِ ٹورۍ یم ساری چیز چھہِ فراق نہِ نظمہِ منز آمتۍ۔ یہ حیران کن ہشر چھہ نہ اتفاقی۔ یمن دۅن نظمن ہند تقابلی مطالعہ چھہ نہ مقصد لیکن یہ کتھ چھیہ ضروری زِ فراق سندس سانیٹس منز چھہ ژیلہ ژیلہ کرن واجنہِ آرایشی تہ روایتی پیکر تراشی سیتۍ صبحک منظر پیش کرنہ آمت تہ ٲخری شعرس منز یہ منظر ڈیشون پیدہ کٔرتھ تسندین امارن یتھے شوبہِ دار صبح پھۅلنک طمع ظاہر کرنہ آمت۔ یہ چھیہ فراق سنز ابتدایی شاعری یتھ پیٹھ کیٹس تہ ارداہمہ صدی ہندین انگریزی رومانٹک شاعرن ہند اثر اوس۔ یہ اثر چھہ ‘صبح’ نظمہ منز تہِ ظاہر۔