فیس بک مشاعرہ جنوری 2015


میہ اوس وعدہ کورمت زِ بہ لیکھہ طرحی مشاعرہ کین غزلن پیٹھ۔ اکس اکس غزلس پیٹھ شعر بہ شعر کینہہ ونن چھہ مشکل، البتہ چھیہ کینہہ عمومی کتھہ پیش۔ و‎ۅمید چھیہ دوستن کھسن یم کتھہ تتھے پاٹھۍ ٹارِ یتھہ پاٹھۍ میہ تہندۍ غزل ٹارِ کھتۍ۔

قاری سندِ حیثیتہ چھس بہ گۅڈنی آہنگ وچھان۔ سہ گوو مطلب زِ غزل چھا میانہِ زیو پیٹھ آرامہ سان کھسان کنہ نہ، پتہ ٲسۍ تن سہ جایہ جایہ پھٹان۔ اگر امہ کین مصرعن ہند آہنگ زیو پیٹھ کھوت، گردان کس صورتس منز نہ بلکہ تلفظ کس صورتس منز چاہے پرنس دوران وقفہ تہِ دنی پین، میون غزل پرنک گۅڈنیک شرط گوو پورہ۔ غزلس منز گژھہِ منظم آہنگ آسن۔ کوتاہ منظم تتھ ہیکن درجہ ٲستھ۔ نقاد سندِ حیثیتہ چھس بہ وزنچ تقطیع وچھان زِ کنہِ جایہ ما چھیہ غزلک وزن ورتاونس منز بل چک گومت چاہے پرنس منز زیو گراے لگہِ یا نہ لگہِ۔ غزلس منز چھہ منظم آہنگ یا کم از کم تقریبا منظم آہنگ، سہ پتہ فارسی ٲسِن یا بدل کانہہ، ضروری۔ وجہ چھہ یہ زِ غزل چھیہ اکھ منظم شعری ہیت یمیک اتھہ روٹ منظم آہنگ بہتر پاٹھۍ کران چھہ۔ یمہ مشاعرہ کہ طرحک وزن اوس فاعلاتن قعلاتن فعلن یُس کاشرِ کہ خاطرہ ہنا مشکل چھہ۔ کاشرِ کہ خاطرہ چھہ اتھ سیتۍ رلون وزن فاعلاتن مفاعلن قعلن زیادہ آسان تکیازِ گۅڈنکس منز چھیہ زہ ژھۅچہ آوازہ اکس جایہ پوتس پتھ یوان۔ امہ کنۍ اگر نہ شاعر وزنہ کین افعالن واقف آسہِ، سہ ورتاوِ یمو منزہ سے وزن یُس کاشرس زیادہ برونہہ ویود تہ سرود آسہِ۔ کینژو شاعرو اوس یۅہے دویم وزن ورتوومت تہ یہ بدل وزن ورتاونس منز ٲسکھ نہ کانہہ غلطی۔ شاید اکھ غزل، یُس پانژو کھوتہ کم شعرن ہند اوس، اوس تیتھ تہِ یتھ منز نہ یمو منزہ کانہہ وزن ورتاونہ اوس آمت بلکہ اوس نہ کانہہ آہنگ زیوِ پیٹھ کھسان ییلہ زن اکس غزلس منز فارسی وزنہ بجایہ کاشر ہیجلۍ وزنک آہنگ اوس۔ ییتہ نس چھہ میون مشورہ زِ چونکہ کُنہِ نتہ کُنہِ منظم وزنک ورتاو چھہ غزلس منز ضروری، اس لیے اگر غزل ونن آسہِ وزن ہیچھن، علمی طور نہ بلکہ ورتاوہ کنۍ، چھہ ضروری۔

mush

ییلہِ غزل آہنگ کہ لحاظہ زیوِ پیٹھ کھوت، بہ چھس قاری سندِ حیثیتہ وچھان زِ امی شاعرن کیا چھہ شعرن منز وونمت، اگر تژھ کانہہ کتھ ونۍ مژ آسین یوس میہ آسانی سان فکرِ تٔر یا فکرِ کھٔژ، بہ چھس واہ واہ کران پتہ ٲسۍ تن یہ کتھ کانہہ مونڈمت خیال۔ مگر نقاد سندِ حیثیتہ چھس بہ وچھان زِ یۅس کتھ وننہ چھیہ آمژ تتھ منز چھا کم سے کم کانہہ ذہانت، سہ چھا دلچسپ، تتھ منز چھا تیتھ کانہہ فکری پہلو یُس میہ معنوی امکانن کن پکناوِ۔ اگر تہِ آسہِ نہ، بہ چھس نہ متاثر گژھان۔ بہ چھس یہ تہِ وچھان زِ کانہہ ویود مضمون چھا دلچسپ اندازس منز وننہ آمت۔ مثلا اوترے دژ میہ مثال:

دلبری ہند یہ ما چھہ کانہہ انداز
حال باون ہیمے ونکھ تل تل

یہ چھہ اکھ ویود مضمون مگر یہ یمہ اندازہ "تل تل” ورتٲوتھ کاشراونہ آمت چھہ، تمہ کنۍ تہ بییہ "یہ ما چھہ” ؤنتھ پننہِ زانکاری پیٹھ شک کرُن زِ کیا پتہ چھہ یہ تہِ ما چھہ دلبری ہند اکھ انداز، یم تہ یتھی نکتہ چھہِ اتھ شعرس منز میانۍ دلچسپی ہرراوان۔ اتھ شعرس منز چھہ تعجب تہِ، شک تہِ تہ سوال تہِ۔ دویمہ مصرعہ کہ "ہیمے” لفظکۍ معنوی امکان تھٲوۍ توکھ تام یک طرفے۔ بہ چھس یہ تہِ وچھان زِ شعرہ کین مصرعن منز کٲژاہ لسانی صفایی، نفاست، صحت چھہ۔ لفظ اگر پانوانۍ واٹھ کھین، زیادہ لفظ ورتاونچ چھیہ نہ ضرورت پیوان۔ بہ چھس وچھان کانہہ بالکلے نوو مضمون یا تجربہ چھا کنہِ شعرس منز پیدہ گومت۔ بہ چھس شعرہ کین رمزن، اشارن، پیکرن، استعارن تہ علامژن تہِ سنان۔ بہ چھس شعرہ چہ موسیقی تہِ سنان۔ بہ چھہ شعرہ فارمہ ہندس کلہم ورتاوس تہِ داد دوان۔

وۅنۍ کروکھ کینہہ شعر پیش یم میہ ذاتی طور کنہِ وجہہ کنۍ پسند آیہ۔ اگر یمن منز تہند کانہہ شعر یا تہندِ پسندک کانہہ شعر آسہِ نہ میہ گژھہِ معافی دنۍ۔ پیٹھمین نکتن پیٹھ گژھہِ غور کرُن مگر میٲنس پسندس تہ ناپسندس گژھہِ نہ زیادہ اہمیت دنۍ۔ میہ چھہ نہ کنہِ ساعتہ مرزا غالب سند شعر تہِ ٹارِ کھسان۔ امہ موکھہ نہ زِ غالبس کیا چھیہ کمی بلکہ امہ موکھہ زِ میۍ اندر چھیہ کیہہ تام کمی۔

چانۍ حالت تہِ بدل ما بوزم
دود ہجرک چھہ دلن سرود کوتاہ
(علی شیدا)

ژھایہ نے کُن ژہ نظر تھاواں چھکھ
قد تہِ مینُن، چھہ گومت تھود کوتاہ
(علی شیدا)

اوش تہ بتہ کھیوو میہ رلٲوتھ شیدا
وٲنسہِ کھیمہا تہ ہودے ہود کوتاہ
(علی شیدا)

ہفت اقلیم چھہ دوریر وۅں دلن
وصلہ کے بریم تہِ بناں سیود کوتاہ
(علی شیدا)

توگ نہ شاید یہ پِلو میۍ لایُن
نتہ اسماں چھہ ونتہ تھود کوتاہ
(شاہد دلنوی)

دود وجودے مکایہ کانڈکۍ پاٹھۍ
پرارِ رودس وۅں نارہ دود کوتاہ
(شاہد دلنوی)

چھم یہ ازلے میہ لیکھتھ ہول تقدیر
بے کرن سیود تہ کرن سیود کوتاہ
(منظور یوسف)

پریتھ اکس چھکھ زہ اچھن منز تیلان
چھکھ ژہ منظور لکن ویود کوتاہ
(منظور یوسف)

واہ یہ شبنم چھلاں گلابس روے
پوز محبت یوہے چھہ سیود کوتاہ
(ہاشم مسعود)

نارہ حسدنہِ دزاں صمد کوتاہ
یی زِ برجناتھ کھوت میہ تھود کوتاہ
(خالد حسین)

آبہ قطرن لیکھن پیوو دریاو
زانہِ قلمے دل تس دود کوتاہ
(منظور خالد)

ٲنہ پھٹرِتھ پانس کر پٲراو
ہاو ذاتس منہ چھکھ شود کوتاہ
(منظور خالد)

میہ نہنوۍ واوہ رنگہِ  سٲری نشاں وچھ
سیکیل تھاویم رچھتھ کانہہ پود کوتاہ
(حمیدہ شاہ اختر)

بہ چھس یہ تہِ وچھان زِ شاعرن کم کم قافیہ چھہِ ورتاوۍ متۍ۔ علی شیداہن چھہِ واریاہ قافیہ ورتاوۍ متۍ یمو منزہ کینہہ برونہہ کنکۍ چھہ نہ۔ شاہد دلنوی ین چھہ مقامی تلفظس فایدہ تلتھ قافین منز نویر پیدہ کرنچ کوشش کٔرمژ۔ کنہِ ساعتہ چھہ کانہہ نوو قافیہ، یُس نہ عام آسہِ یا زیادہ ورتاونہ آمت آسہِ، کانہہ نوو خیال ذہنس منز انان۔ یمن غزلن ہندۍ زیادہ تر خیال یا مضمون چھہِ منڈۍ متۍ۔ یمن منز چھہ نہ کانہہ نویر۔ پریتھ شاعرس پزِ یہ سوچن زِ اگر سہ تہِ ونہِ یہ میہ پتاہ چھہ، میہ آسہِ نہ تمۍ سندس شعرس منز کانہہ دلچسپی۔ اگر سہ تہِ ونہِ یہ تمس پانس پتاہ چھہ مگر یہ آسیس معلوم، ثیقہ پاٹھۍ معلوم، زِ میہ چھہ نہ پتاہ، تسند شعر آسہِ میانہِ خاطرہ دلچسپ۔ اگر شاعر تہِ ونہِ یہ تمس پانس پتاہ آسہِ، تسند شعر آسہِ تمۍ سندِ خاطرہ بے مزہ۔ شاعرس چھہ لامحالہ تہِ ونن یہ نہ تمس پتاہ آسہِ تہ میہ۔ امیک مطلب گوو یہ زِ نویر گژھہِ شاعرس نشی پیدہ گژھن، ادہ واتہِ میہ نش نویر۔ اتی نے کیا چھہ مطالعہ بکار یوان۔ کیا چھہ وننہ آمت تہ کتھہ پاٹھۍ۔ اتی ہیکہِ شاعر وچھتھ تمۍ سندِ خاطرہ کیا گنجایش چھیہ۔ اکثر شعر چھہِ عروضی تہ ہیتی خانہ پری۔ نہ چھہ مضمونس منز نویر نہ وننہ کس اندازس منز تہ نہ لفظن ہندس ورتاوس منز۔

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Google photo

آپ اپنے Google اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ /  تبدیل کریں )

Connecting to %s