تابانہ چہہ افتابہ مگر ہے قسمت

شیرازہ کس خصوصی شمارہ امین کامل نمبرس منز چھہ پروفیسر مرغوب بانہالی ین، کامل سنزِ قصیدہ نظمہِ ہند رسا جاودانی سندس پیش رو قصیدس سیتۍ اکھ تقابلی مطالعہ پیش کورمت۔ اتھ مطالعس منز یم نتیجہ کامل سندس قصیدس متعلق کڈنہ آمتۍ چھہِ، تمن ہنز تصحیح چھیہ کاشرِ ادبچ یہ شاہکار نظم (بقول محمد یوسف ٹینگ) سمجھنہ خاطرہ ضروری۔

مرغوب چھہ اتھ مختصر تقابلس منز زہ کتھہ برونہہ کن انان، بلکہ چھیہ یمے زہ کتھہ تقابلک مقصد تہِ۔ اکھ یہ زِ رساجاودانی سندۍ قصیدن چھیہ کاملس پنن قصیدہ وننچ تحریک دژمژ۔ دویم یہ زِ ییتہِ پیش رو  قصیدس منز بھدرواہ کہ حسنکۍ تعریف چھہِ، کامل سندس قصیدس منز چھہِ کشیرِ ہندِ حسنکۍ تعریف۔ ییتہِ ہُتھ منز 26 شعر چھہِ، یتھ منز چھہِ 41 شعر تہ امی تناسبہ چھہ اکھ بییہ کس «برونہہ نیران»۔ مرغوب سنزہ یم دۅشوے کتھہ چھیہ اکھ اکس سیتۍ تعلق تھاوان تہ دویم سراسر غلط۔

گۅڈہ تُلو اسۍ دویم کتھ۔ تمی منزہ نیرِ گۅڈنچہ کتھہِ ہند ژھۅژر۔ رسا جاودانی چھہ پننس قصیدس منز بھدرواہ چہ سرزمینہِ ہندِ حسنکۍ، اتہِ کین بسکینن ہنزِ خۅش خلقی تہ اتہِ کہ موسمہ چہ شادابی ہندۍ تعریف کران۔ یہ چھہ مرغوب سندۍ نے لفظن منز «وطن پرستانہ» قصیدہ۔ مگر کامل سندس قصیدس وطن پرستانہ ونن چھہ نہ صحیح۔ یہ دھوکہ چھہ مرغوبس اتھ قصیدس منز کشیر ہنزِ خوبصورتی متعلق کینژن شعرن ہنزِ موجودگی کنۍ لوگمت۔ سہ چھہ اتھ پورہ قصیدس نہ سنیومت تہ نہ چھین پننہ مقصد چہ جلد بازی کنۍ سمجھنچ کوشش کرمژ۔ کامل چھہ نہ کشیرِ قصیدہ لیکھان بلکہ «پننس پانس» یمہ کنۍ یہ قصیدہ پننۍ اکھ الگ اہمیت تھاوان چھہ۔ امہ قصیدک موضوع چھہ امہ کس گۅڈنکۍ سے شعرس منز نون:

تابانہ چھہ افتابہ مگر ہے قسمت
مۅغلن چھیہ پننۍ ژھانپ بہت دۅن چشمن

یعنی کامل سنز تخلیقی شخصیت چھیہ آفتابکۍ پاٹھۍ ادبہ کس آسمانس پیٹھ گاہ ژھٹان مگر افسوس زِ وچھنہ خاطرہ چھیہ نہ اچھ۔ اندۍ پکھۍ چھہِ راتہ مۅغل یمن پننین اچھن ہنز ژھانپھ امہ نظارہ نش محروم تھٲوتھ چھیہ۔ کامل چھہ برونہہ کن پننس پانس حق کس ظہورس سیتۍ مشابہت دتھ تہ وقتہ کین نمرودن پنن پان ژیتس پٲوتھ اتھ خیالس منز خیر وشرک تواریخی، روحانی سرینیر تہ تناظر پیدہ کران۔

گویا قصیدچ شروعات چھیہ یہ زِ خدایس اوس کامل زنمس انن۔ یتھ جایہ سہ زنمس اونن سۅ بنٲون تمس ظاہری حسنہ کنۍ شایان شان۔ امی تعلقہ چھہِ قصیدہ کس گۅڈنکس حصس منز کشیرِ ہندِ مارۍ منزرکۍ 8 شعر آمتۍ۔ کامل چھہ یمن تعریفن ہند وجہ یتھہ پاٹھۍ بیان کران:

ازلے ژیہ کورے مٲنزِ اتھو یمۍ شابش
تس ٲس خبر آسہِ یہ کمۍ سند مسکن 

امہ پتہ چھہ ینہ والین نون (9) شعرن منز  پننۍ تعریف کران ۔ مثلا:

اکھ جلوہ اگر ہاوہ متن ہتھ معشوق
کم اوش پننۍ بھول گژھن نوش لبن

بلۍ اچھرہ گیندن میون چھہ طرحن پھر پھہہ
ژھور میلہِ قلم میون چھہ کیا تاں ورقن

غم میون چھہ گل خندہ بشارت پگہچ
کُس زانہِ بہ کۅس زان کراں چھس حرفن

قصیدس منز چھہ کنہِ حدس تام اکھ ٹریجڈک صورت حالک ہیو ماحول پیدہ گژھان۔ اکھ جلال آور تخلیقی شخصیت، جاے تہِ تس شایان شان مگر وقت – وقت چھہ فن کہ لحاظہ ناموزون، قدر ناشناس۔ قصیدس منز چھہ پننیو تعریفو پتہ شین ستن شعرن منز وقتہ چہ ناموزونیژ ہند بیان۔

افسوس زِ ژھۅژہ کانۍ بنیم سرہنگ
شکرانہ میہ کن دھیان کمے تھوو ہوسن

نٹۍ نغمہ تہ کٹۍ ڈالہ چھہ تہذیبک رنگ
فن ہاوہ تہ کیا ہاوہ یتھس وقتس ون

خۅددار ضمیرن چھہ حکم کرتلہِ شرم
اعلان چھہ شیطان وچھتھ پیون سجدن

وقت سازگار نہ آسنکۍ، بے قدری یا بے توجہی ہنزِ شکایژ ہندۍ حوالہ چھہِ شاعرن نش کھلہِ میلان مگر تواریخی حوالو کنۍ چھیہ کامل سندِ قصیدچ معنی خیزی ہران۔ اتھ منز چھہ کامل بنی نوع آدم سنزِ تخلیقہِ ہندس واقعس کن اشارہ کرتھ کشیرِ ہشہِ مارۍ منزِ  جایہ جنت تہ دنیاہس سیتۍ، پننس پانس ظہور آدمس تہ وقتس شیطان سنزِ چالاکی سیتۍ استعاراتی واٹھ دوان۔ ٲخرس پیٹھ چھہ کامل پننہِ انا پسندی تہ کشیرِ ہنزِ شادابی گواہ بنٲوتھ پننس فنس منز اطمینان تہ بقا لبان:

چھس نار تہ نارس چھیہ نہ پوراں کانہہ ریہہ
چھس آب تہ آبس چھہ نہ دامن ادرن

یوت تام چھہ بترٲژ تہ افتابس سنگ
شاداب یہ ریشۍ وٲر تہ یم میانۍ سخن 

یہ چھیہ مختصر پاٹھۍ امہ قصیدچ تفہیم۔ امہ پتہ چھیہ نہ شکچ کانہہ گنجایش زِ کامل سندس قصیدس چھہ نہ رسا سندس وطن پرستانہ قصیدس سیتۍ کانہہ موضوعی تعلق۔ یمن ہندۍ موضوع چھہِ الگ۔ اکھ چھہ قدرتی نظارن ہنز تصویر کشی تہ بیاکھ قصیدہ کہ معیاری تعریفہ مطابق اکس با اثر شخژہ (کامل) سندۍ گۅن گیوان۔ لہذا چھیہ نہ مرغوب سنز 26 بمقابلہ 41 شعر تہ تمہ تناسبہ یمن قصیدن ہنز مان مان کانہہ مطلب تھاوان۔ وۅں گوو یہ کتھ چھیہ ضرور زِ یمن ہند وزن تہ قافیہ نظام چھہِ کنی۔ اتھ متعلق چھہ کامل ونان «وری واد برونہہ دژ میہ شاید مرزا عارف سندس وننس پیٹھ لال چوک وۅستہ کھار٭ سندس وانس منز رسا سندس مسودس نظر تہ کینہہ تعارفی سطرہ لیچھمس تتۍ نے۔» کامل چھہ مزید لیکھان: «رسا صابنۍ بیاض پران پران گوو امیک یہ مصرعہ میٲنس ذہنس اندر جاے گیر ‹یا یکھ تہ وچھکھ پانہ وناں کتھ جوبن›۔ وقتس سیتۍ گوو میہ مشتھے یہ مصرعہ چھہ کہند۔ کتھ آیہ تہ گیہ۔ مگر امہ پتہ واریاہ وری گژھتھ  ییلہ میہ قصیدہ نظم لیکھنۍ ہیژ یہ مصرعہ آم غیر شعوری طور برونہہ کن تہ بنیوو میانہِ نظمہِ ہندِ قافیہ نظامچ بنیاد۔»

اگر کاملن رسا جاودانی سنزِ دیکھا دیکھی منز قدرتی نظارن ہنز تصویر کشی کٔرتھ کشیرِ ہندس شانس منز قصیدہ وونمت آسہِ ہے، تیلہ بنہِ ہے رسا سند قصیدہ صحیح معنیس منز محرک۔ چونکہ کامل سند قصیدہ چھہ موضوعی طور بالکل مختلف، لہذا چھہ نہ یمن دۅن قصیدن درمیان ہیتی ہشرہ علاوہ کانہہ رشتہ۔ کاملن چھیہ پننہ قصیدہ خاطرہ رسا سندِ قصیدچ زمین تسندین ذہن نشین مصرعن ہندِ حوالہ ورتٲومژ تہ مرغوب بانہالی سندِ طرفہ امچ نشاندہی چھیہ پرن والین ہندِ خاطرہ دۅشونۍ قصیدن متعلق اکھ دلچسپ شیچھ۔ باقی یُس شعر لرِ لور تھٲوتھ یمن ہند تقابل کرنہ آمت چھہ سہ چھہ نہ یمن قصیدن متعلق کانہہ کتھ گاشراوان بلکہ مرغوب سنزِ شعر فہمی شک آور بناوان۔

شعوری طور یا غیر شعوری طور کامل سند پننہ قصیدہ خاطرہ بیۍ سنز زمین (وزن تہ قافیہ) ورتاون چھیہ پریتھ ادبہ چہ، خاص کر مشرقی شعری ادبہ چہ روایژ ہندین حدن منز اکھ عام کتھ۔ زمینن ہند ہیوت دیت چھیہ فارسی، اردو تہ کاشرِ شاعری منز اکھ مسلم حقیقت تہ اکھ مثبت روایت۔ نہ صرف چھیہ اکھ اکۍ سنزہ زمینہ، بلکہ مضمون تہ استعارہ حتی کہ پیکر تہِ یسلہ پاٹھۍ ورتاونہ آمتۍ تہ کالہ پگاہ چھہِ مرغوب سندِ دسۍ تہِ ورتاونہ یوان۔ شاعری ہند یہ موضوعی تہ ہیتی تسلسل چھہ متنن ہندِ حوالہ جاتی نظامک اکھ حصہ۔ یہ حوالہ جاتی نظام چھہ رسومیاتن، شعری ہیتن تہ تجربن/موضوعن ہنز اکھ شعوری تہ غیر شعوری کرۍ ہانکل یمہ سیتۍ ادبچ نہ صرف تخلیق بلکہ تفہیم تہِ ممکن سپدان چھیہ۔ امہ پوت منظرہ پتہ چھیہ مرغوب سنز یہ گراو زِ «ادبی دیانتک تقاضہ گژھہِ ہے پورہ اگر کامل صٲب کم از کم حاشیس منزے رسا صٲبنہِ تحریک دنک ذکر کرِ ہے» بے معنی بنان۔ گراو اگر صحیح تہِ مانون#، مگر محض امہ گراوِ مۅکھہ قصیدک غلط مفہوم پیش کرُن چھہ نہ صحیح۔

٭ بقول کامل وۅستہ کھار «اوس درویش حسابہ وانس منز آسان۔ کنن دنن نہ کہنی۔ دکان اوس پریتھ وزِ ادبی، سیاسی، مذہبی عقیدت مندو سیتۍ بٔرتھ آسان تہ پانوانۍ بحثہ مباحثہ کران۔ اڈۍ اژان تہ اڈۍ نیران۔»

# اگر بییۍ سنز زمین ورتاوتھ حوالہ دین ضروری چھہ تیلہ گژھہِ مرزا غالب یا باقی شاعرن ہندین غزلن پیٹھہ کنہ زمینہِ ہندین مالکن ہند ناو بطور حوالہ لیکھنہ یُن، تیلہ گژھہِ راہی سندین نصفہ کھوتہ زیادہ غزلن پیٹھہ کنہِ کامل سند ناو آسن۔

ٲنس کتھ چھم روزن لور

ٲنس پیٹھ چھہ سانین زبانن منز ساسہ بدۍ شعر وننہ آمتۍ۔ اکھا چھہ امین کاملن تہِ وونمت، یس لوہ تہ پروہ کتابہِ منز شامل چھہ۔ کتھ چھیہ کنی مگر نوِ اندازہ وننہ آمژ۔ شعر چھہ یہ:

بتھہِ پتہ بتھہِ پننے اوحال
ٲنس کتھ چھم روزن لور

بہ چھس واریاہ کالہ پیٹھہ سوچان زِ یہ شعر اگر پھرتھرہ وننہ آسہِ ہے آمت، شاید ما گژھہِ ہے امہ کس تاثیرس منز ہریر۔ اتھ منز چھہ میہ باسان سوالہ برونہہ جواب آمت یمہ کنۍ سوال غیر ضروری بنان چھہ تہ شعرس منز یۅس خلاف توقع کتھ ٲس سۅ چھیہ راوان۔ ممکن چھہ کاملس تہِ ما آسہِ ہے امیک احساس مگر شعرچ زمین ما دیہِ ہے پھرتھرک اجازت۔ امچ بہتر صورت چھیہ یہ بنان۔

ٲنس کتھ چھم روزن لور
بتھہِ پتہ بتھہِ پننے اوحال

تہند کیا خیال چھہ؟ تہۍ چھوا اتفاق کران کنہ اختلاف؟

اگر اتفاق کران چھو، تیلہ چھیہ شعرکین دۅن مصرعن ہنز ترتیب تہِ اہم بنان۔ اگر نہ تیلہ ما چھہ یہ میون ذاتی پسند، ناپسندک معاملہ۔

نہج رسالہ، اکھ سوال؟

نہج رسالہ کہ اجرا سیتۍ چھہِ کینہہ سوال ذہنس منز وۅتھان۔ یمہ ساعتہ میہ نیب شروع کور میہ برونہہ کنہِ ٲسۍ کینہہ اہم مسلہ یمن پیٹھ بہ امہ کہ ذریعہ کتھ کٔرتھ ڈایلاگچ دعوت دنۍ یژھان اوسس۔

املاہک مسلہ اوس اکھ۔ اتھ کٔر میہ نیبس منز عملی شکل دنچ کوشش۔

عروضک مسلہ اوس بیاکھ یتھ متعلق اکھ کنفیوژن کھڑا کرنہ اوس آمت۔ میہ دژ اتھ روایتی تہ خشک موضوعس نیبس منز واریاہ جاے، شاید ضرورت کھوتہ زیادہ۔ عروضس متعلق کرۍ میہ روایتی تصوراتن سیتۍ سیتۍ لسانیاتی وچھن کونہ کنۍ تہِ تم نکتہ پیش یمن نہ سانۍ ادیب واقف تہِ ٲسۍ۔ زیادہ تر ادیبن گوو سہ سورے کلہ پیٹھۍ۔

سانین نوین ادیبن برونہہ کنہِ نثرکۍ یم نمونہ ٲسۍ تہ یم کاشرِ شعبہ کہ طرفہ بڑھ چڑھ کر پروناونہ یوان ٲسۍ تمن ہندِ جادِ منزہ نوۍ ادیب کڈنہ خاطرہ انہِ میہ تمن ہنزہ کمزوری تہ خامی برونہہ کن تہ تتھ اسلوبس دژ میہ تنقید کہ خاطرہ زیادہ اہمیت یُس زیادہ موزون تہ مناسب اوس تہ کُنہِ نتہ کُنہِ بہانہ کاشر شعبہ کس تدریسس منز رد کرنہ یوان اوس۔

میہ کٔر کوشش زِ نو ۍ ادیب انوکھ برونہہ کن، یتھ منز زیادہ کامیابی سپز نہ مگر خاطر خواہ پیش رفت سپز۔

غرض نیب کہ خاطرہ اوس میہ ذہنس منز اکھ پروگرام، یہ اوس نہ نظمن تہ غزلن ہند خالص اکھ مجموعہ۔

یوت تام نہ نہج رسالہ کانہہ مخصوص نکتہ نظر برونہہ کن انہِ اتھ تہ مثلا شیرازس منز روزِ نہ کانہہ فرق۔ گۅڈنکۍ زہ شمارہ وچھتھ چھہ حوصلہ تہِ ہران تہ مایوسی سپدان۔ حوصلچ تہ خوشی ہنز کتھ چھیہ زِ واریاہن نوین لیکھن والین چھیہ جاے دنہ آمژ، مایوسی چھیہ یہ زِ امین کاملس تہ رحمن راہی یس پیٹھ شایع شدہ مضمون تہ غلام نبی فراقنۍ مطبوعہ شاعری چھیہ صرف یہ ہاونہ خاطرہ شامل کرنہ آمژ زِ نہج چھہ نہ کنہِ گروپس سیتۍ منسلک۔ ییژ کیا مجبوری ٲس امہ اعلانچ زِ گۅڈے شایع شدہ چیز آیہ شامل کرنہ۔ یہ صفایی کمس چھیہ پیش کرنہ آمژ؟ یہ صفایی چھا ٹینگس تہ راہی یس پیش کرنہ آمژ؟ نیبک یس رویہ ٹینگس تہ راہی یس متعلق چھہ، نہج ما آو دراصل سہ زایل کرنہ خاطرہ کڈنہ؟ کامل تہ راہی یس پیٹھ گۅڈنکۍ سے شمارس منز مضمون شامل کٔرتھ ما چھہ نہج اکھ خود تردیدی سٹیٹمنٹ پیش کران؟ نہج ما چھہ یہندۍ سے دفاعس یا وننس پیٹھ کڈنہ آمت؟

اگر نہج ٹینگ، راہی، مرغوب بیترِ ادیبن ہندۍ نگارشات تہ یمن متعلق شایع شدہ مضمون یا گۅڈے معلوم کتھن ہند پروپیگندا شایع کرنہ خاطرہ کڈنہ آو، تیلہ چھیہ نہ امچ ونکیس صحیح طور کانہہ ریلونس تکیازِ مۅردن چھہ نہ زو اژان۔ کامل یا راہی یا ٹینگ کیا لیکھن وۅنۍ تیتھ یہ تمن وننے رودمت چھہ؟ یمن یہ ونن اوس تہِ چھہ یمو وونمت، وۅنۍ چھیہ بس اداکاری یۅس یم سٹیجن پیٹھ کھستھ کران چھہِ۔ یمن ہنز چھیہ نہ ونۍ کین کانہہ ریلونس۔ بہ ونہ رفیق رازس تام یہ ونن اوس تہِ چھہ تمۍ تہِ گۅڈے وونمت تہ بھرپور اندازس منز وونمت۔ ییتہ یور کیا گژھہِ آسن یمہ کنۍ اکھ نوو رفیق راز برونہہ کن ییہ۔ یہ گوو رفیق راز یُس ونہِ تخیلی طور سرگرم چھہ، تا بحال چھیہ نہ کامل یا راہی یا ٹینگ سنز کتھے۔

نہج رسالک مرکز گژھہِ نوو ادیب آسن۔ نوین ادیبن گژھہِ یہ نکتہ فکرِ ترُن زِ یوت تام نہ اسۍ پننین پیش رون نش انحراف کرو، ادب ہیکہِ نہ برونہہ پکتھ۔ ییلہ پیش رو ییتیاہ بڈۍ بنن زِ تم بنن نوین ادیبن ہندِ خاطرہ اکھ نفسیاتی ٹھور اکھ ناقابل عبور معیار، زانن گژھہِ انحراف چھہ ضروری۔ ییتہ نیو ٹی ایس الیٹ تس پتہ ینہ والیو شاعرو رد کٔرتھ، اقبال فہیمنۍ پاٹھۍ وونکھ نہ الیٹ سنز شاعری چھیہ نہ شاعری بلکہ وونکھ سۅ چھیہ نہ سۅ شاعری یۅس تم لیکھنۍ یژھان چھہِ۔ تمو بدلوو پننہ خاطرہ شاعری ہند رۅخے۔ الیٹ سند آبجیکٹیو کورلیٹیو آو سیودے رد کرنہ، شاعرو لٲج ذاتی شاعری کرنۍ۔ پرانہ جنریشنہ ہنز چھتر چھایا منز چھہ نہ ادب تخلیق کرنہ یوان۔ پرانین تھپھ کرتھ چھہِ تمے پکان یمن پانس کوٹھۍ آسن نہ۔

اگر یمن سانین بزرگ ادیبن متعلق مطالعہ پیش ین کرنہ، سۅ روزِ مردہ زندہ کرنہ کھوتہ زیادہ بہتر کٲم۔ تمن مطالعن منز وچھو اسۍ زِ یم کتھہ پاٹھۍ چھہِ سانہِ خاطرہ رلیونٹ۔ مگر تتھ منز تہِ گژھۍ ژھری عقیدت تہ لحاظ تہ ادب (مطلب عزت) بدلہ ادبی معیار پیش نظر روزنۍ۔

سوال جواب (ضمیہ)

میر مسرور: واریاہ کالہ پیٹھہ چھہ میانس ذہنس منز یہ سوال کھٹکان زِ کاشرس ادبس منز چھا ونیس تام تیتھ کانہہ فن پارہ (نظم کیو نثر) لیکھنہ آمت یُس دنیا کس بہلہ پایہ ادبس منز تحریر چھہ سپدمت یا اسۍ ہیکوا پننہ ادبک کانہہ نمونہ دنیا کین عظیم فن پارن لرِ لور تھٲوتھ، مثلا شیکسپیر سند ہیملٹ، کنگ لیر یا سفوکلیس سند اوڈیپس یا شاعری منز ملٹن ننۍ شاعری، ورڈسورتھ سنز شاعری یا افسانس منز چیخوف سندۍ عظیم افسانہ؟

جواب: میر مسروو سند سوال آو ژیرۍ پہن۔ چونکہ یہ چھہ اہم سوال، اتھ جواب دین چھہ ضروری، مگر امہ کس جوابس منز دمہ بہ بنمین کتھن پیٹھ غور کرنچ دعوت:

یمن زبانن ہنز کتھ تۅہہ کرمژ چھیہ تمن منز چھیہ زبان پرنچ تہ پرناونچ تہ سیاسی، علمی، اقتصادی، پریتھ سطحس پیٹھ امہ کہ ورتاوک اکھ مستقل تہ مستحکم تواریخ۔ چاہے سۅ پتہ انگریزی چھیہ یا اردو۔ کاشر زبان ٲس نہ سنسکرت دورس تام ادبی اظہارن منز مجرا سے۔ مسامسا آیہ اتھ منز ادبی اظہارہ رنگۍ کینہہ سرگرمی فارسی دورس منز۔ لل دید تہِ چھیہ امی فارسی دورچ پیداوار۔ امہ وقتہ آو شعری اظہارن منز فنس کن توجہ کرنہ۔ مگر امہ زبانۍ ہند یہ ورتاو رود سیٹھا محدود۔ پننس ادبس پیٹھ غور کرنک گۅڈنیک موقعہ چھہ کاشرین ترقی پسند دورس منز میلان۔ ادبی اظہارہ رنگۍ یۅس زبان ونہِ کھوکھشہ پکان آسہ، تتھ ما ہیکو امہ رنگۍ ترقی یافتہ زبانن سیتۍ مقابلہ کٔرتھ۔ کاشر زبان چھیہ محکومن ہنز زبان، یمن زبانن ہند ناو توہہ ہیوت تم زبانہ آسہ/چھیہ حاکمن ہنزہ زبانہ۔

بجر کتھہ پاٹھۍ چھہ میننہ تولنہ یوان۔ یہ تہِ چھہ ہیچھنہ ہیچھناونہ یوان تہ کانہہ فن پارہ یا شاعر کوتاہ بوڈ چھہ یا عظیم چھہ یہ تہِ چھہ نقادن تہ تدریسی نظام کہ ذریعہ ذہن نشین کرنہ یوان۔ اسۍ چھہِ کینژھا فارسی، اردو تہ واریاہ مغربی تعلیمہِ ہندۍ پروردہ (میہ چھہ نہ اتھ متعلق کانہہ منفی یا ناپسند رویہ)۔ تتھ روایتس منز یمن فن پارن یا شاعرن اسہِ سکولن منز پرناوۍ پرناوۍ عظیم وننہ آو، تمن ورٲے چھہ نہ اسہِ اندۍ پکھۍ کانہہ عظیم باسان۔ اسہ چھیہ پتاہ زِ شیکسپر یا تسندۍ ڈراما چھہِ عظیم تکیازِ اسہ چھیہ کتھ بار بار وننہ آمژ تہ پرناونہ آمژ۔ تہ یہ تہِ ہیچھناونہ آمت زِ شیکسپیر تہ تسندۍ ڈراما کتھہ پاٹھۍ چھہِ عظیم۔ جرمنی منز کمس چھیہ خبر زِ غالب چھہ کانہہ شاعر، عظمت تھاوۍ تو الگے۔ تمہِ پتہ غالبس منز کُس فن پارہ چھہ یُس عظیم چھہ۔ سٲنۍ روایت چھیہ نہ بڈۍ یا ایمبیشس فن پارہ لیکھنچ روایت۔ سانہِ روایژ منز چھیہ کلہم شاعری نظرِ تل تھاونۍ ضروری۔ غالب تہِ چھہ بوڈ ییلہ اسہِ تم معیار قبول کرۍ یمو کنۍ غالب تہ تسنز شاعری بٔڈ بنییہ۔ غالبس سپدۍ انگریزی پاٹھۍ پتمین پنژاہن ورین منز شیہ ستھ ترجمہ تہ ادہ ہیوت کینژو شاعرو (پرن والیو نہ) غالب سند ناو زانن۔ میر تقی میر زاننک چھہ نہ کانہہ سوالے۔ کینژو پنڈتو کٔر لل دید تہِ پروجیکٹ کرنچ کوشش، تہ تسند تہِ ہیوت کینژو انگریزی شاعرو ناو، شیخ العامس کس زانہِ؟ نتہ کیا چھیہ یمن دۅن فرق؟ گویا عظیم تہ عظمتکۍ پیمانہ تہِ چھہِ تنقیدی، تدریسی نظام آپراوان۔ غالب چھا بوڈ شاعر کنہ احمد فراز چھہ بوڈ شاعر، اکس عام انسانس کیا چھیہ خبر یوت تام نہ سہ ہیچھناونہ ییہ زِ اسۍ کتھ ونو عظمت۔ عظمت تہِ چھہ اکھ مفروضہ یُس اکھ سماج طے کران چھہ۔ یہ فیصلہ کرنس منز اوس نہ یا چھہ نہ سٲنس دورس منز سانہِ سماجک کانہہ دخل۔

اگر اسۍ پننۍ لکہ شاعری کلہم پاٹھۍ عالمی سطحس پیٹھ پیش کرو، اتھ کیازِ میلہِ نہ مقام، مگر پیش کرنہ خاطرہ چھہ شرط یہ شاعری ییہ جمع کرنہ۔ یہ ییہ مطالعس منز اننہ۔ امیک تنقیدی محاکمہ سپدِ۔ عالمی سطحس پیٹھ یِن تم مطالعہ پیش کرنہ۔ پرنہ تہ پرناونہ۔ ییتہ آیہ نہ چینچ قدیم شاعری (زبردست شاعری) کنہِ کھاتس منز تھاونہ، کاشرس کُس پرژھہِ؟

لہذا گژھہِ نہ یہ مسلہ آُسن زِ اسہِ چھا کانہہ فن پارہ عالمی فن پارن برونہہ کنہِ تھاونس لایق پیدہ کورمت بلکہ یہ زِ اسہِ یوس شاعری پیدہ کرمژ چھیہ، سۅ کتھہ پاٹھۍ مۅلوون۔