ازچ فیس بک کتھ باتھ — رسول میرنۍ زہ شعر

32(میہ دۆپ کٲنسہِ ما یِن یم کمینٹ بکار، ییتین تھاوو محفوظ کٔرتھ۔

فارسی شعر

(بشیر بڈگامی صابس کُن):  توہہِ کیازِ اتھ پیٹھ شک زِ رسول میر اوس نہ فارسی پاٹھی شعر ونان۔ بوزِو

کشیدی قوس ابرو، تیر مژگان بهر قتلم
نشستی در کمین اے ترک کماندار امشب

یہ چھہ بہترین شعر۔ نذیر آزادس آے تمۍ پھیر سون ظن رسول میر سندس لفظن ہندس انتخابس کُن یتھ شاذے کانہہ توجہ اوس دوان، راہی صابن چھہ رسول میرنین یمن شعرن "ہچوۍ گُڈنہِ تھیکناوُن” وۆنمت، باقین ہنز کتھ تھاوۍ تو الگے۔ تُرک کماندار گۆو اے کماندار معشوقہ، (خبر لوکھ ما سوچن یہ تُرک (ترکی) کیا اتہِ نس کران)۔ کانہہ ما ونہِ امشب چھہ صرف ردیف چہ مجبوری کنۍ۔ کمین تہ امشب چھہِ (ابرو تہ مژگان کِس کریہنیارس سیتۍ تہِ) اکھ اکۍ سند معنی مکمل کران۔ یہ بوزتو شب خون۔ امشب چھہ اتھ اکھ واقعاتی تجربہ بناوان، بییہ یتھ کتھہِ کُن تہِ اشارہ زِ ازۍ کہ شبہ اوس کیاہ تام سپیشل سپدن وول (شاید وعدک شب) مگر وچھ امی شبہ کۆرتھ میون قتل۔ ژکہِ چھُے ژیہ میون قتل مراد، مگر وچھ کیُتھ کمینہ چھکھ یم ابرو تہ مژگان بنٲوتھ میہ پھساونہ خاطرہ۔ یہ دپی زِ تہِ پتۍ کنۍ چھکھ حملہ کران (کمین اوس اکھ قوم یُس ژورِ پاٹھۍ حملہ اوس کران، ایمبش) یہ شعر چھہ اکھ بوڈ تہ سرون مضمون ہیتھ۔ بڈۍ بڈۍ شاعر چھہِ یاد پیوان۔

رسول میرنین شعرن منز چھہِ واریاہ فارسی لفظ یم تمن ہندین قدیم معنی ین منز ورتاونہ آمتۍ چھہِ، تُرک تہِ چھہ یموے لفظو منزہ اکھ یُس مجازس منز معشوق سندِ خاطرہ ورتاونہ اوس یوان۔ یہ چھہ ہاوان امۍ سند فارسی شعرک مطالعہ چھہ وسیع تہ وقیع اوسمت۔

________

ریختہ

جب آیا تو نے گھبرایا ہمارا من الا جانو
دیا دل تو پرائی نال رلائی تن الا جانو

نذیر آزادن چھیہ یمن شعرن پیٹھ کتھ کرمژ، مگر تمۍ چھیہ اتھ سلسلس منز اکھ غلطی کرمژ۔ تمۍ چھیہ یمن شعرن منز اردو زبانۍ ہنز آمد وچھمژ۔ دراصل اوس یہ اکھ فیشن یمیک ابتدا امیر خسرون کۆر۔ رفیق رازن چھہ کتہِ تام اتھ یمن شاعرن ہنز غیر سنجیدگی وۆنمت، حالانکہ تژھ کتھ چھیہ نہ، امیر خسرو اوس نہ غیر سنجیدہ شاعر، نہ اوس محمود گامی تہ نہ رسول میر۔ رسول میرن یم شعر چھہِ دراصل پنجابۍ (پنجابۍ اردو تہِ ہیکیوس ؤنتھ) یتھ یم واقف ٲسۍ۔ بشیر بڈگامی صاب، یُس شعر توہہِ نقل کۆروہ، تتھ پیٹھ چھیہ نذیر آزادن کتھ کرمژ۔ آزاد چھہ دۅیو لفظو پریشان کۆرمت۔ "نے” تہ "رلایی”۔ نوٹس منز چھُن لیۆکھمت زِ "نے” گژھہِ نہ آسن بلکہ گژھہِ آسن "نہ” یعنی جب تو نہ آیا۔ صحیح معنی یس چھہ ووتمت۔ رلایی لفظس متعلق چھُن وۆنمت زِ رسول میرن چھہ رلاون لفظ اردو گرامرہ حسابہ گۆنڈمت۔ انۍ نس برابری۔ حقیقت چھیہ یہ زِ یم دۅشوے لفظ چھہِ پنجابۍ لفظ۔ اگر ونہِ تہِ کانہہ لاہور گژھہِ سہ بوزِ یم لفظ یتھے پاٹھۍ۔ نہیں چھہ پنجابۍ تلفظ مطابق "نے” بولان، نستہ کنۍ۔ واریاہن اردو شاعرن مثلا جون ایلیا سندس کلامس منز تہِ وچھو تۆہۍ امیک ورتاو "نئیں”۔ پرٲنس اردوس منز تہِ اوس اتھ یۆہے تلفظ۔ ارود اوس نہ کشیر منز ورتاوس لہذا آسہِ مسودہ لیکھن والیو اتھ فارسی مطابق "نے” لیۆکھمت۔ یہ گژھہِ نہ اردوک "نے” بلکہ پنجابی "نے” پرُن۔ یتھے پاٹھی چھہ "رلائی” ਰਲਾਈਂ پنجابۍ لفظ یمیک مطلب مِکس کرُن چھہ یعنی ملایی۔ رسول میر سندۍ یم اکثر شعر چھہِ پنجابۍ تہ کاشر، نہ کہ اردو تہ کاشر۔ اردوک لول گۆو پوزے نذیر آزاد مگر تمہِ سیتۍ ما انو اسۍ اصلس ٹوٹ!!

پس نوشت: یہ "نے” ہیکہِ اردو، پنجابۍ بدلہ کاشر "نے” تہِ ٲستھ۔

"الا جانو” فقرس پیٹھ تہِ چھیہ نذیر آزادن کتھ کرمژ مگر اتہ تہِ چھین غلطی رژھا کرمژ۔ یہ چھہ نہ امۍ سے خطا بلکہ سارنے میہ سان، سٲری چھہِ اتھ یی پران۔ مگر اکہ منٹہ خاطرہ مانی تو کشیر منز چھہ نہ اردو آمت، صرف چھہ کاشر تہ فارسی "جانو” لیکھمتس لفظس کیا پرو؟ jano کِنہJanu (janooo) یہ لفظ تہِ چھہ دراصل پنجابۍ لفظ جانوٗ**یعنی میری جان، ٹاٹھنیار، میانہ زوا، جانانا۔ میانہ خیالہ چھہ نہ یہ کاشر "میانہِ جانو”، یہ چھہ نہ لفظ جانو بلکہ لفظ جانوٗ۔ کاشری پاٹھی ونو نہ جانو بلکہ ونو جانانو، جانو چھہ زیادہ تر پننس پانس کُن ونان۔ بہرحال، اتھ پیٹھ ہیکہِ اختلاف ٲستھ۔ میہ چھہ پورہ یقین یہ چھہ پنجابۍ جانوٗ۔ **ਜਾਣੂ

نذیر آزادن چھہ یہ شعر میہ باسان شاید غلط سمجھمت یتھہ پاٹھی سٲری اتھ غلط پاٹھۍ پران چھہِ، بہ تہ اوسس۔ نذیر آزاد چھہ لیکھان "یعنی اگر ووپرینہ دل دیتتھ، سو رلایی تنہ سیتی تن۔ یہ چھہ اندیشہ تہ تہ ممانعت تہ۔” میہ باسان رسول میر چھہ نہ ونان امس زِ ووپرس دیتتھ دل، اگر تژھ کتھ آسہے تیلہ کیا شکایت ٲس۔ سہ چھہ شاید ونان ژیہ دیتتھ میہ دل یا میہ دیت ژیہ دل، مگر تن درایکھ ووپرس سیتی رلاونہ۔ دیا دل، تو پراے ساتھ رلایی تن الا جانو

پتھ رود "الا” اتھ پیٹھ چھہ نذیر آزادن جان بحث کۆرمت تہ جان نتیجہ برونہہ کُن انۍ متۍ۔ اتھ متعلق چھہ میہ یُتے ونن زِ یہ چھہ فارسی لفظ "الا” یتھ پرٲنس فارسی یس منز "ھلا” تہِ ونان تہ لیکھان ٲسۍ۔ تتی پیٹھہ چھہ کاشر "ہلا” آمت۔ اسۍ چھہِ ونان ہلا، ہلا گژھ، بیترِ۔ الا تہِ چھہ اسۍ ونان۔

یہ چھہ پزۍ پاٹھۍ نداییہ (تنیہہ تہِ) بقول نذیر آزاد۔ فارسی یس منز چھہ یہ خالص الا ورتاونہ آمت، الا ای تہِ، الا یا تہِ، الا تا تہِ، الا گر تہِ۔

الا ای ترک آتش روی ساقی
به آب باده عقل از من فروشوی
سعدی

یمو تمام کتھو علاوہ چھیہ یہ کتھ زِ اتھ شعرس منز چھہ میہ باسان مسودہ لیکھن والین گڑبڑ گۆمت۔ چونکہ اتھ منز چھیہ مختلف زبانہ ورتاونہ آمژہ، اتھ ما آسہِ لوکن یاد تھاونس، لیکھنس منز گڑبڑ گۆمت۔ اڈۍ چھہِ اتھ شعرس منز ساتھ بدلہ نال لیکھان تہ ونان، یُس میانہِ خیالہ زیادہ قرین قیاس چھہ۔ بشیر بڈگامی صاب، توہہ چھہ پرائے بدلہ پرائی لیوکھمت۔  ٹینگ سندس کلیاتس منز چھہ ہمارا بدلہ ہمارے دِتھ۔ یہ غزل چھہ وژنہ چہ چالہِ وننہ آمت۔ تمہِ حسابہ چھہ نہ مطلع صحیح بیہان۔ کیہہ تام گڑ بڑ چھس گۆمت۔

مہجورنہِ نظمہِ "آزادی” متعلق

بٲتک ہند موضوع

کلیات مہجورس منز چھہ تسند اکھ مشہور بٲتھ درج۔ عنوان چھس "آزادی”۔ عنوانس تلہ کنہِ mahjoor

چھہ مۅٹین لفظن منز لیکھتھ "بوقت تقسیم ہند”۔

یہ چھہ سرونٹے اپر۔ بٲتک دۆیمے شعر چھہ یتھہ پاٹھۍ:

یہ آزادی گۅڈنۍ ییلہ درایہ نٔنۍ ہندوستانس منز
لچھو پاٹھۍ آیہ انسانن لداں تلہ کرایہ آزادی

یہ چھہ سیۆدےہاوان یہ چھہ نہ ہندوستان چہ آزادی متعلق بٲتھ۔ یہ چھہ کشیرِ ہنزِ "آزادی” متعلق۔ امہ آزادی برونہہ ٲس ہندوستانس منز آزادی آمژ۔ اتھ متعلق چھہ امین کامل اکس نوٹس منز لیکھان زِ "امہ نظمہ ہند تعلق چھہ نہ ہندوستان کس تقسیمس متلق بلکہ نیشنل کانفرنس کس اتھس منز اقتدار ینہ پتہ یس ظلم تہ ستم تہ بے راہ روی عوامس وچھنۍ پییہ، اتھ منز چھیہ تمچ ترجمانی۔ مگر مہجور اوس چالاک۔ اکہ طرفہ اوس عوامچ ترجمانی کران تہ دۆیمہ طرفہ اوس حکومت تہ لیڈرشپس تہِ ساتھ دوان، یمہ کنۍ امہ نظمہِ ہندۍ ٲخری ستھ شعر تمہ وقتہ شایع آیہ نہ کرنہ تکیازِ تمے ٲسۍ نشاندہی کران زِ نظم کر آیہ لیکھنہ۔”

محمد یوسف ثینگ چھہ نظمہِ پتہ کنہِ "(نامکمل نظم)” ردج کران یُس شاید مسودس منز آسہِ، البتہ چھہ بٔنم نوٹ لیکھتھ تم ستھ شعر تہِ درج کران یمن متعلق کامل سند نوٹ میہ پیٹھہ کنہِ درج کۆر۔

"یہ طنزیہ نظم سپز پننہِ وقتہ بڈہ مشہور۔ مہجور صٲبنہِ اتھ چھہِ اصل مسودس منز نۆم ستھ شعر تہِ یم تمہِ وقتہ مختلف وجہو کنۍ شایع ٲسۍ نہ کرنہ آمتۍ۔” (نوٹ، کلیات مہجور، صفحہ 326)

ثینگ چھہ نہ ونان تم مختلف وجہ کیا ٲسۍ۔ ممکن چھہ یہ ما آسہِ ہے مہجورنے پانے نوٹ لیۆکھمت زِ یم شعر آیہ نہ مختلف وجہو کنۍ شایع کرنہ۔ ٹینگن کۆر یہ پننہِ طرفہ پیش۔

____________

بٲتکۍ پاٹھ

یم ستھ شعر آیہ پتہ سون ادب 1963 منز شایع کرنہ۔ کینژن لفظن چھیہ سون ادب تہ کلیات مہجورس منز فرق۔

ستن جاین کژھن کٔرہس تلاشی تۅملہ مۅچھہ باپتھ
پھۆتین منز أنۍ تُلِتھ پُژِ ژھایہ آرم بایہ آزادی
(کلیات مہجور)

کژھن تامت ستے لٹہِ وارہ وچھہس تۅملہ مۅچھہ باپتھ
پھۆتِس کیتھ أنۍ تُلِتھ پُژِ ژھایہ آرم بایہ آزادی
(سون ادب 63)

نٔبر شیخ زانہِ کتھہِ ہند معنہِ تس ژلۍ خانہ دارنۍ ہیتھ
سہ گۆو فریادۍ پتۍ کنۍ لوکہ ہندِ تس پیایہ آزادی
(کلیات مہجور)

نٔبر شیخ زانہِ کتھہِ ہند معنہِ تس ژلۍ خانہ دارنۍ ہیتھ
سہ گۆو فریادۍ پتۍ کنۍ تس وۅپر گرِ پیایہ آزادی
(سون ادب 63)

امین کامل سند اکھ نوٹ چھہ زِ مہجورن اوس یہ پتم شعر تمس یتھہ پاٹھۍ بوزنومت:

نٔبر شیخس بچارس دۅہلہِ پھٔرۍ آزادیا میجکھ
دۅہن تارن دِتِن فریاد یۆت تاں پیایہ آزادی

یمن ستن شعرن ہند ٲخری شعر چھہ یتھہ پاٹھۍ:

یہ پولو گراونڈس منز ژایہ تتہِ بیٹھ شالہ گۅپھہِ اندر
توے شہرس اندر شامس کران وُنگرایہ آزادی

__________________

بٲتک زا سنہ

اتھ شعرس چھہ ٹینگ نوٹ لیکھان "اصل مسودس منز چھہ نہ تاریخ ردج”۔

سیتۍ چھس لیکھان ” مطلب ریڈیو کشیمر یتھ تمہِ وزِ پولوگراونڈس منز سٹوڈیو اوس۔” حالانکہ ٹینگ ہیکہِ ہے امہ پیٹھہ تہِ سنہ اندازہ کٔرتھ۔ ریڈیو سٹیشن لۆگ جولایی 1948 منز پولو گراونڈہ پروگرام نشر کرنہِ۔ کامل چھہ اکس جایہ اتھ نظمہِ متعلق لیکھان زِ "1949 منز بوزنووس بہ مہجورن، میٲنس شہرہ کس کرایہ مکانس منز، یُس بڈشاہ کدلس نش اوس۔ جون پیٹھہ اگستس تامک کس تام ریتھ اوس، مگر نظم ٲس میانہِ خیالہ تمہ برونہچ 47/48 ٹھچ۔”

عبدالغنی نمتہ ہالۍ چھہ پننس مضمون شیرازہ مہجور نمبر ستمبر دسمبر 87 اندر لیۆکھمت زِ یہ بٲتھ تہ لالو لالو دتۍ تمس مہجورن ییلہ سہ تمس سمکھنہِ گیاو کۅنگ پوش رسید بک ہیتھ۔ کۅنگ پوش کڈنک فیصلہ آیاو بقول کامل 49 اندر کرنہ، چناچہ تمیک گۅڈنیک شمارہ چھپیوو ستمبر 49 منز۔ امہِ حسابہ تہِ ٲس یہ نظم 49 برونہہ یا 48/49 درمیان لیکھنہ آمژ۔

شہناز رشید سنز نٔو کتاب

shah

http://www.kashmirink.in/news/artliterature/a-bold-new-voice-of-kashmiri-poetry/538.html

 

Shahnaz Rashid has emerged as a grounded voice of today’s Kashmiri poetry. Considered an echo of Rafiq Raaz, he just did not crack the ascendancy of Raaz; he paved a way of supremacy for himself in a familiar yet neoteric language of signifying proportions. His stunning command of language helps him connect it to the contemporary mood and reflection in an effortless manner.His poetry apprises us of his nonpareil dexterity skills penetrating his ghazals and nazms equally. Shahnaz’s latest collection of poems, Door Pahan Dewaran Manz, his second in just ten years, is a book most of the Kashmiri poets have failed to harvest over a lifetime. I am convinced that the book will infuse a new genius into the garden variety of our literary scene.

Shahnaz’s ghazals have a unique diaphanous quality that we rarely witness in his contemporaries. We may debate about the presence of complexity of feeling, but undeniably there is no ambiguity of image or metaphor in his verse, which, however, does not exclude deeper or layered meanings from his poetry.This quality of accessibility, together with indigenous historico-cultural allusions, has allowed Shahnaz to accrue a widespread appeal.

In Shahnaz, we see an addition to the diversity of voices following tremendously successful Rahi of later years who as a prig had roughly made dogma out of his personal taste and talent. We badly needed an antidote to this esoteric tendency for art which poets like Shahnaz have provided. In poetry, being simple takes more skill and effort than being difficult. Poets often prove themselves clever but, as Shahnaz does, we mustunderstand and celebrate experience, otherwise known as life.

Shahnaz’s book contains 80 compelling ghazals and 40 persuasive nazms, laying out his 196-page journey through life’s “rainbow of loss and gain” that “frequently communicates that under the blue dome of the skywhatever we look at is a glass house of servility and ephemerality … as well as a courtyard of a towering house of awe.” A successful marriage of both perspectives is what Shahnaz’s poetry is all about.

It makes difference to have a poet’s sizeable amount of work in view to become aware of the things that occupy and obsess him, to learn to recognize his characteristic voice, his personal idiom. With a prompt second collection, Shahnaz has offered this opportunity of kosher discovery to his readers and critics for which we must be thankful.