اپزۍ تعریف بنہِ طنز

بہ کیازِ کرہ کٲنسہِ اپزۍ تعریف۔ کٲنسہِ ہنز حوصلہ افزایی چھیہ نہ اپزیو تعریفو سیتۍ کرنہ یوان۔ تعریف یتھ چیزس شبن تتھۍ چھہِ تعریف کرنہ یوان۔ اگر کانسہِ ہندس مجموعس منز اکوے غزل آسہِ تتھۍ ین تعریف کرنہ، اگر کٲنسہِ ہندس غزلس منز اکوے شعر آسہِ تتھۍ ین تعریف کرنہ۔ اگر کانسہِ ہندس شعرس منز اکوے مصرعہ آسہِ تتھۍ ین تعریف کرنہ، اگر کٲنسہِ ہندس مصرعس منز اکوے لفظ آسہِ تتھۍ ین تعریف کرنہ۔ غرض تعریفن ہند موقعہ تہ جواز چھہ ہمیشہ موجود آسان مگر تعریف شبن تتھۍ یہ تعریفس لایق آسہِ۔  حوصلہ افزایی گوو تمن چیزن ہنز نشاندہی یم تعریفن لایق آسن تہ یم نہ آسن تم نظر انداز کرنۍ۔

یوت تام نہ میہ کانہہ چیز بوزنہ آو، بہ لیکھہ نہ تتھ چیزس پیٹھ سنجیدگی سان (غیر سنجیدہ ژہین منز چھس بہ کینہہ تہِ لیکھان تہ یمن ہند تعداد چھہ ژور)۔ رسالن ہندین خطن منز چھہِ اکثر اپزۍ تعریف کرنہ یوان تکیازِ امچ چھیہ اکھ روایت قایم سپزمژ زِ ییلہ رسالس خط سوزو اکھ جملہ گژھہِ ایڈیٹر سندس تعریفس منز آسن، اکھ جملہ رسالہ کس گیٹ اپس تہ چھپایہ پیٹھ۔ اتی اگر وار آو تہ شمارس منز شامل ادیبن تہِ اکۍ سے شہس منز تعریف زِ یمن ہند کلام تہِ اوس جان۔ اسہِ سارنے چھہ پے زِ یم چھہ اپزۍ تعریف آسان تہ یم شبن اتۍ نے رسالہ کس خط و کتابت کالمس منزے۔ میون بلاگ چھہ نہ خط و کتابتک کالم۔ "نیب” رسالس منز تہِ ٲس میانۍ کوشش زِ بہ چھپاوکھ نہ یتھۍ خط، حالانکہ سۅ ٲس یمن ہنز جاے۔

پٔریو یہ اقتباس: "مہجور مٔرتھ دۅیہ ترہہ وہرۍ پتہ یۅسہ وۅنۍ کلچرل اکاڈمی ہندِ طرفہ ‘کلیات مہجور’ ناوچ کتاب میہ حال حالے وچھ تہ پٔر امچ ترتیب، تدوین، کتابت، رسم خط، تصویر، سرورق، کاغذ تہ چھپاے چھہ نہ صرف قابل دادے یوت بلکہ تحسینہ آفرینس لایق تہِ۔” یارہ بل (مضون)، رنجور کشیمری، شیرازہ، وری 22، شمارہ 4

یہ چھہ نہ رسالس خط سوزنہ آمت بلکہ محمد یوسف ٹینگس پیٹھ داہن صفحن ہند اکھ مضمون۔ اگر کٲنسہِ تعریفے آسن کرنۍ، وچھن چھہ آسان تعریف کتھ کرو۔ غلط چیزن ما کرو تعریف ییلہ زن تعریفن لایق کٲتیاہ چیز موجود آسن۔ رنجور کشیمری چھہ ژکہِ ٹینگ سندس اتھ کلیات مہجورس طنز کران باسان۔ اگر صحیح چیزس تعریف کرنہ بجایہ غلط چیزس تعریف کرو، سہ گژھہِ طنزس منز تبدیل۔

mahjoor

میہ چھہ یہ افسوس سان ونن پیوان زِ ‘کلیات مہجور’ چھہ اکھ سیٹھا وسۍ پایہ پیش کش۔ امچ چھپاے چھیہ نہ کنہ تہِ معیارہ معمولی ہیور، امہ کھوتہ بہتر چھپاے چھیہ اکاڈمی ہنزن امہ برونہہ شایع کرنہ آمژن کتابن سپزمژ۔ امیک کاغذ چھہ سیٹھا ردی، سیٹھا معمولی درجک۔ اتہِ نس تہِ کرو امہ برونہہ چھپاونہ آمژن اکاڈمی ہنزن کتابن سیتۍ موازنہ۔ تصویرس کیا تعریف چھہِ، تہِ آو نہ میہ سمجھ۔ رسم خط چھہ سے یُس امہ وقتہ چین اکاڈمی ہنزن کتابن چھہ۔ رسم خطس تہ کلیات مہجور کین تعریفن کیا تعلق چھہ، تہِ تور نہ میہ فکرِ۔ شاید چھہ رسم خط نش رنجور کشیمری سند مراد املا۔ املاہکۍ کھرۍ چھہ تتھے پاٹھۍ اتھ کتابہِ منز تہِ موجود۔ سے املا یس امہ ساعتہ اکاڈمی ہنزن کتابن منز اوس آسان۔ کتابتس کیا تعریف چھہِ؟ یۅہے کٲتب چھہ اکاڈمی ہنزن باقی کتابن تہِ کتابت کران۔ بلکہ چِھن گۅڈنکین نثری صفحن لفظ اکھ اکس سیتۍ ژیلتھ لیکھمتۍ۔ کتابت چہ ییژاہ غلطی اتھ کتابہِ منز میہ نظرِ گیہ تیژاہ غلطی چھیہ نہ میہ کنہِ کتابہِ منز نظرِ گمژہ۔ نثر تھٲوۍ تو الگ (تتہِ چھہ نہ شمارے)، مہجورنس کلامس منز چھہِ صفحہ پتہ صفحہ پروف ریڈنگ نہ سپدنہ کنۍ لفظ غلط چھپیمتۍ۔ یہ چھیہ افسوسچ کتھ۔ ترتیب کارن چھہ نہ پانہ امیک پروف پرنک کانہہ تکلیف کورمت۔ بلکہ چھہ باسان زِ صحب آسنہ کنۍ چھین سٲرے کٲم پننین ماتحتن پیٹھ تراومژ۔ جایہ جایہ چھہ فٹ نوٹ غلط چھپیمتۍ۔ پرن وٲلس چھہ تمن پیٹھ پانہ ریسرچ کرن پیوان۔ (یم کتھہ ونہ سے یمۍ کلیات مہجور پورمت آسہِ، صرف وچھمت آسہِ نہ۔) کلیات مہجور چھہ نہ پیٹھمین تمام چیزن ہندِ تعلقہ کنہِ حسابہ تعریفن لایق۔ یہ چھیہ تژھے یژھ اکھ بیاکھ کتاب چھیہ۔ یمن چیزن شوبہ ہن تعریف تیلہ ییلہ یم امہ وقتہ چین عام کتابن ہندِ معیارہ ہیور آسہ ہن۔ تعجب چھہ کتابت، کاغذ، چھپایہ ہند ذکر چھہ کرنہ آمت، باینڈنگہ ہند چھہ نہ ناو تہِ ہینہ آمت۔ ییلہ زن تمیک حال تہِ لایق تعریف چھہِ۔ کلیاتک یہ حال برونہہ کنہِ ٲستھ چھہ صاف ننان زِ رنجور کشیمری چھہ تعریف بدلہ طنز کران۔ کتابت، کاغذ، چھپایہ ہندین تعریفن منز چھہ نہ رنجور کشمیری دادے یوت دوان بلکہ چھہ یمن چیزن لایق تحسین تہ آفرین زانان مگر یہ داد تہ تحسین تہ آفرین کس؟ امہ کھوتہ بوڈ طنز کیا گژھہِ آسن۔

رنجور کشمیری تہ کلیات مہجورک ذکر آو منزے۔ ونن اوسم بہ چھس نہ یتھہ پاٹھۍ تعریف کران یُس طنز بنہِ۔ میہ چھیہ نہ اپزۍ تعریف کرنس منز کانہہ دلچسپی۔

ٲخرس پیٹھ رنجور کشمیری سندۍ یم شعر:

ییتہِ روح ضمیر آزاد
آسن خیال آزاد
ییتہ سارنے کُنے واد
سٲری دوان پٔزس داد
اپزس نہ ییتہ چھپن جاے
تتہِ میانہِ کشیرِ دتہ جاے

کمۍ ژیہ ووننے عروض پر خالد

manzoor

چھکھ ژہ پھیران دربدر خالد
کمۍ ژیہ ووننے عروض پر خالد
چھُے نہ روزاں ژیہ یاد کالک سیُن
یاد تھاوکھ ژہ کیا بحر خالد
بحرِ منز بحرہ کیا یواں پھٹۍ پھٹۍ
زیٹھ کانہہ، کانہہ چھیہ مختصر خالد
فاعلاتن ـ مفاعلن ـ فعلن
بوزۍتھے چھُم یواں چکر خالد
رکن کیا گوو ہیجلۍ بناں کِتھہ کنۍ
پیش چھا زیر چھا زبر خالد
کم سخنور چھِہ اتہِ گمتۍ ہٲرتھ
اتِہ چھیہ ہیچھۍ ہیچھۍ تہِ بییہ کسر خالد
رومی ین تام وون عروضس پیٹھ
من نہ دانم ـ (میہ چھنہ خبر) خالد
بوز مشورہ ژہ گینگراوُن ہیچھ
وچھتہ شعرن گژھی سیزر خالد
یتھنہ باقی ژیہ کھوژھناوی کانہہ
شاعری چھے کرنۍ  تہ کر خالد

منظور خالد سند یہ غزل چھہ تمۍ سند تازہ غزل۔ یہ شاعر چھہ زیادہ تر عقیدتی شاعری کران تہ شاید شاعری کن بنیادی طور امی جذبہ کنۍ لوگمت۔ حالانکہ امہ کارہ خاطرہ چھیہ شاعری زیادہ موزون تہ نہ مناسب۔ منظور خالد اگر امی جذبہ کنۍ شاعری کن آو مگر وۅنۍ کیتس کالس روزِ پھرِ پھرِ اکاے کتھ ونان۔ امۍ سنزِ کتھہِ تہِ ہُرِ معنی تہ مطلب اگر یہ اتھ دۅہدشک معاملہ بناوِ نہ بلکہ ییہ وقفہ پتہ وقفہ یتھین شعرن منز تیتھ نویر ہیتھ زِ پرون گژھہِ مشتھ۔ عقیدتی شاعری منز تہِ اگر نہ نویر پیدہ کرنہ ییہ، یہ چھیہ تکراری تہ بورنگ شاعری بنان۔  اتھ شاعری منز چھہ خدشہ روزان زِ  شاعری بدلہ چھہ شاعری ہند مواد اہم بنان۔

پیٹھم غزل چھہ امۍ سنز اکھ کوشش تمہ موضوع منزہ نیبر نیرنچ۔ یہ غزل چھہ خود شاعری تہ امہ کس فنس متعلق شاعر سند ردعمل پیش کران۔ مخصوص موضوع کہ تکرارہ منزہ نیبر نیرنچ یہ کوشش گیہ میہ امۍ سندین یمن شعرن منز تہِ نظرِ، یم موضوعس تتھہ پاٹھۍ پیش کران چھہ زِ یمن منز چھہ جہات پیدہ گژھان۔

میلی نہ کہنی وچھ مہ تھدین پھریستہ کلین کن
گردن تہِ تھکی خطرہ چھے دستار پییی وسۍ

چھے قدرتن دیتمت ژیہ ہنر روز حدس منز
پننیو اتھو ینہ پانہ کانہہ شہکار پپی وسۍ

نِواں چُھم دل دہن شیرین تمۍ سُند
دُعاهن گوژھ میہ اکھ آمین تمۍ سُند

نظر ٹورے یہِ تس میانس کلس پیٹھ
خطا چھم یی پنن دستار دیتمس

میہ وچھمس اوش اچھن یس ووج ژیہ زونتھ
یہ کمۍ سند دود از للنوو شینن

شاعرس گژھہِ کامن سینس بدلہ سینس آف ہیومر آسن۔ سہ چیز چھہ خالد سندس کلامس منز کلہ کڈن ہیوان۔ لفظن تہ خیالن سیتۍ چھہ شاعر تمہِ ساعتہ گندان ییلہ تس منز خود اعتمادی پیدہ گمژ چھیہ آسان۔

مختلف موضوعن پیٹھ شعر وننہ سیتۍ چھہ نہ ایمان ڈلان۔ ضروری چھہ نہ زمینی تہ آسمانی عشقچی کتھ ییہ کرنہ۔ شاعری ہیکہِ کنہِ تہ چیزس پیٹھ سپدتھ۔ ہاکہ نلس پیٹھ تہِ تہ ہچوین چونچن پیٹھ تہِ، بشرطیکہ تتھ منز آسہِ پرن والۍ سندِ خاطرہ ذہنی تسکینک سامانہ۔ شفیع شوق سنز اکھ نظم چھیہ "ماگن”۔ تسنز بہترین نظم۔ نہ چھہ تتھ منز آسمانی عشق تہ نہ زمینی عشق۔ کانہہ تہِ نماز گزار شاعر اگر تژھ ہش نظم ونہِ، تس روزِ نہ ایمان راونک کانہہ خدشہ۔

منظور خالد چھہ عقیدتی شاعری علاوہ سماجی بدمعاشی ین شعرک موضوع بناوان۔ یہ ہن چھیہ جان مگر کوشش گژھہِ روزنۍ یہ گژھہِ نہ صرف موزون کلامی تام محدود روزن بلکہ گژھہِ امیک اظہار تخلیقی سطحس پیٹھ سپدُن، کم از کم زبانۍ ہندِ چالاک ورتاوہ تہ ذہانت سان۔  تخلیقی سطح نش چھہ میون مراد پیکر، تشبیہہ، استعارہ، اشاریت، تلمیح، بیترِ۔ رحمن راہی سند یہ قول چھہ ییتہ نس پھرُن لایق زِ ” فلسفیانہ بیان چھہ کنہِ ذہنی سرگرمی ہند انت تہ انجام آسان تہ توہ کنۍ حد بند سپدمت آسان۔ اتھ برعکس چھہِ ورتاونہ آمتۍ استعارہ تہ تشبیہہ یہ دپۍ زِ تہِ پانہ اکھ عمل، اکھ حرکت یتھ رنگہ رنگہ معنوی امکان نرِ آلوان باسان چھہِ۔”

منظور خالد چھہ مزاحیہ شعر تہِ لیکھان یمن ہند محرک تس اندۍ پکھۍ درینٹھۍ ینہ وول سماجی بدمعاشی ین ہند ماحول چھہ۔

منظور خالد چھہ فنی طور مستحکم شعر ونان، بس چھیہ موضوعن ہندِ تنوعچ ضرورت یۅس میہ چھیہ وۅمید سہ کرِ وارہ وارہ پورہ۔

فی البدیہہ شعر

cropped-muneeb21.gif

(منظور خالد نہ ناوہ)

نتہ کس تج کرنۍ عروضی کتھ
بس چھہِ ساری دواں کتابن گتھ

زہ سبب تریہ وتد تہ کینہہ ارکان
فکرِ یس ترۍ بنیوو کیا تامتھ

کتہِ تم ہرنہ چالہ، ککوہ پکن
شاعری منز متییہ وونۍ ہاپتھ

کھوت نہ کاڈین وگرنہ وچھہن لوکھ
اکہ اکہ دامہ نیو میہ دنیا چیتھ

امین کامل سند افسانہ "گابہ گندُر”

کٲشر افسانہ اوس اکہ وقتہ داہ باہ صفحہ آسان۔ لۅکٹۍ افسانہ تہِ ٲسۍ مگر عام طور اوس افسانہ داہن صفحن اندۍ پکھۍ آسان۔ وارہ وارہ ژھوکیوو یہ۔ وجہ نامعلوم۔ شاید ژیون نثر لیکھن والیو زِ کاشر پرنک رفتار چھہ نہ تیز یمہ کنۍ زیٹھۍ افسانہ پرنۍ شاید وبال جان بنان چھہِ۔ نتہ ما چھیہ یہ افسانہ نگارن ہنز کہالت۔ کیہہ تام وجہ چھہ۔ بہرحال وجہ یہ چھہ تہ تہِ، امین کامل سندِ افسانک ہوجم تہِ ژھوکیوو تمن افسانن منز یم تمۍ 1980 یور کن لیکھۍ۔ گابہ گندر چھہ یُتھے اکھ مختصر افسانہ۔ یہ چھہ "سوال چھہ کلک” افسانکۍ پاٹھۍ خالص ڈایلاگس پیٹھ مشتمل۔ کامل چھہ یمن افسانن منز کنہِ علاوہ تبصرہ ورٲے اکھ صورت حال پرن وٲلس برونہہ کنہِ تھاوان۔ یہ افسانہ چھہ اکی آنہ واریاہن سطحن پیٹھ پرنک مطالبہ کران۔

از اوس نہ ٹرینہِ منز پرن کیت کہنی، لہذا نیوم یہ افسانہ ٹایپ کٔرتھ۔

story

گابہ گندُر

امین کامل

(دسمبر 1996)

"وچھو گابہ گندرا، یہ بہ ونے تی چھے کرُن، تی چھے ونن تہِ۔ چھُیہ منظور؟” میہ وونس دو ٹوک فیصلہ پاٹھۍ۔

قصہ سپد یہ۔ میہ آو اکھ پلاٹ ذہنس اندر تہ ہیوتم افسانہ لیکھن۔ اکھ کردار ژورُم گابہ گندر تہ ترووم پلاٹ چہ استتھۍ (سچویشنس) اندر، یہ پریتھ افسانہ نگار کران چھہ۔ مگر امس بدبختس آیہ خبر کیا ہۅنگہ تہ کورنم واد۔

استتھۍ ٲس یہ۔ اکھ وٲناکھ صحراو۔ نہ کُنہِ زن نہ زانپٹ۔ اسمانس ووکھہ بتھہِ کٹہ کال اوبر نال ؤلتھ۔ باسان سہ واو پھیریس زِ انسانس نیہِ ژپندر کٔرتھ تُلتھ تہ ٹھاسیس خبر کتھ شایہ تڑاخ کٔرتھ پٔتھرس۔ گابہ گندرس اوس تن تنہا اتھ وٲرانس اندر مویوس نظر تلِتھ اسمانس کن ونن "خدایہ یہ کتھ شنیاہس اندر آس ہینہ۔ یہ کمن پاپن ہند چھم سزا۔ میانہِ خدایہ یمہِ وٲراگہ منزہ نیرنچ کڈتم کانہہ وتھ، نتہ آسیم چھۅچھہ کتُر کرۍ کرۍ زو دین۔” امہِ پتہ اوسس گہے دچھنۍ تہ گہے کھورۍ وٲراگہ مژرس اندر دورُن نیرن وتھ ژھارنہ مۅکھہ۔ ادہ یہ گابہ گندر ووتھم بٔڈتھ تہ بولتھ "بہ پکے نہ اتھ وٲناکھس اندر، نہ دمے خدایس کن بداد۔ ژیہ ہیوتتھس بہ سیاست کارن ہندِ اندرے استعمال کرُن۔ ژیہ چھے ظہرا ہٲل گٲمژ کردار اننۍ تہ وانہِ لاگنۍ۔ مگر بہ چھہ سے نہ تمو سیدہ بوٹو منزہ۔ بالکل نہ۔”

"ہیا ما لاگ یہ بکھ” میہ وونس بُتھ کٔرتھ "سیود کرو کلامہ۔”

"ژہ کیا سیود چھکھ پانہ” امی دتم جواب "ژیہ آیی نا کُنہِ کانہہ آدم بستیاہ اتھہِ۔ کانہہ خۅش یِون اوند پوکھا۔ زنانہ مرد دۅہ دینک ویوہار کران، پھیران تھوران۔ شرۍ یمے لالہ پھلۍ ہوۍ گندان درۅکان۔ خبر ژیہ کیازِ چھے انسانن سیتۍ کھٔر۔ چھرا ویران تہ دٔدون سوچان۔ سیزن ویزن کتھن دم پھٹۍ تہ کھرۍ دار بناوان۔ میہ چھے نہ اتھ سیتۍ بروبدی۔ بہ چھہ سے نہ میژِ لۅپن کینہہ تہِ۔”

"ہیو لۅپنس ہا چھہ ٹھوس آکار پرکار آسان” میہ گوو امۍ سند واد موت "ژیہ نہ پنن بتھ، نہ تھر۔ یہ چھے تہِ چھے میون دیت، کلہ پیٹھہ نلس تام۔”

"ہنہہ۔ بڈہ منت چھیتھم تھٲومژ۔” امی کورم خندہ "ہیو میہ اوس نا پنن وجودے کانہہ، تیا؟ بہ ہا اوسس چانین کاڈین منز مزس اندر تکیس سیتۍ ڈوکھا دتھ بہت۔ ادہ پیی میہ پیٹھ نظر تہ اونتھس کڈتھ۔ میانیو شانو پیٹھۍ پننہ افسانہ نگاری ہند بندوق چلاونہ خاطرہ۔”

"ہیو ژہ چھکھ کسو تیوت” میہ آو جان منس پیٹھ "گژھو مر کنہِ نالہِ منز، یوت گُرِ میہ کرُم۔”

"نالہِ منز؟” امۍ تروو شیطانۍ کھنگالہ "تتہِ ہا کھالہم ژہ پانس مور کٔرتھ واپس۔”

"تلو تلو چھہم نا ژہ توتہِ خبر کیا لاس۔” میہ وونس اتھہ گلوتھ۔

"آسہ ہا نے لاس تہ ژورتھس کیازِ، ہہ ہہ ہہ” امس ویژ نہ میانۍ کتھ۔

"شہمت ہسا پھٔرم، بییہ کیا” میہ اوس شرارتہ سیتۍ پان الان "میہ دوپ سیدِ پدِ چھکھ، ادہ ژیہ ہیو ورہ ہولے چھم نہ وچھمت۔”

"ادہ سا تہ ژھن سارۍ سے بلایہ۔ نیایی کتھ چھہ کرُن۔” امۍ وون اطمینانہ سان ہیو "آیہ نہ پانوانۍ بروبدی، پان ماریی کتھ چھیہ۔ بہ اژے اورۍ کاڈین منز واپس۔”

"ہیو تھوہ تھوہ، تور ہا دمے اژنہ۔ خبر ژیہ کیا بوزتھس بہ۔”

"وچھ کُس دیم نہ اژنہ۔ ہیو تیلہِ لجیا میانہِ اور اژنچ خبر زِ وۅنۍ لگی۔” امۍ وونم تھیکتھ۔

"ہیو دوپمے ہا، بہ چھسے نوکر۔ تل سا تھپھ۔” میہ گنڈس گلۍ "میہ نسا چھہ نہ افسانے لیکھن۔ انس بلایہ۔”

"ژہ کسو گوکھ افسانہ نہ لیکھن وول، ہونہہ” امۍ کورم طنز ہیو "بہ ہا لیکھناوتھ، بییہ تی یہ بہ یژھہ۔ چون مجال چھا نہ ونن۔”

"کورم کُس خطا” میہ دژ ڈیکس ژنڈ "یا ژہ بنوومکھ کردار تہ ییتہِ پیٹھہ ہور تام تھوومے ناو گابہ گندر۔” بہ آس سخ ہینہ "ادہ سا تہ ون کیا چھم لیکھن، ونُو؟”

"گیہ کتھ، وۅنۍ آکھ نا لیہ” امۍ گلنوو باز زینتھ ہیو کلہ۔

"ژہ ہا تراوکھ میہ ذلیل کٔرتھ، افسانہ نگارن اتھہِ ہا اسناوہم۔”

"کینہہ تہِ اسناوے نہ” امۍ وونم اسونہِ نرم دہانہ "ژہ مان صرف میانۍ اکھ کتھ۔”

"ہیم سا مچلکہ لیکھتھ۔ بد بتھس ہے کردار بنوومکھ۔” میہ وونس پھوشتھ۔

"ادہ ژہ چھکھ بڈہ لڑایہ گور۔ یتھہ پاٹھۍ ما اندِ۔ ہنا ہیچھ تاب تحمل” امۍ دژم داے۔

"ہتہ سا ہیوچھم تاب” میہ وونس دزتھ "ون سا کیا چھم کرُن۔”

"آ، بہ ونے۔ ژہ کر میہ سیتۍ رسا مسا۔”

"ہیو، بہ کرا ژیہ سیتۍ رسا مسا؟” میہ گنڈن ریہہ "پننس کردارس سیتۍ؟ یہ ہا گوو تاون۔”

"مسا کر” امۍ وون ژٹتھ ہیو "بہ تہِ چھس نہ سوۍ پونز زِ چانین رزہ درسن پیٹھ تلہ وۅٹہ تہ لتھوہ پان۔”

"ہیو کلہ دود ہا تلتھم۔ یہ کۅسا بلایہ کٔرم پانس اگادِ” میہ تراوۍ ہتھیار "ہتہ سا کورم رسا مسا۔ ون سا کرُن کیا چھم؟”

"کرُن چھے نہ کہنۍ۔ صرف یہ زِ بہ کرے تمہ آیہ رول یُتھ میون ناو ہمیشہ خاطرہ زندہ روزِ۔۔ فلانۍ کہانی ہند کردار گایہ گندر۔”

"گوو میہ چھہ چون نگارہ واین۔ ژہ علمن کھالن” میہ ترکراویس اچھ "ہیو گایہ گندرا، تمہ ہا چھے رایہ، بوزتھا۔ بہ ہا لیکھہ تمہِ آیہ افسانہ یُتھ میون ناو ژۅپارۍ شہرہ لبہِ۔ ژہ کۅسا پھۅپھس مج گوکھ؟”

"ہہ، ہہ،ہہ،ہہ” امۍ تروو ٹھہہ ٹھہہ اسن "میہ دوپ ژیہ چھے گوج۔۔ مگر ژہ چھکھ ژکہِ ژھوژ ڈون۔ کینہہ نبا کہنۍ نہ” یہ ونان ونان لوگ ژلنہِ۔

"ہیو ہیو، ژلان کوتو چھکھ؟ میہ دژس تھانتھرتھ کریکھ "کتھ بوزو، گابہ گندرا، کتھ بوزو” امۍ بوز نہ کہنۍ۔ یہ ہیوتن میانین اچھن دیدمانہ زنتہ ہواہس اندر تحلیل سپدُن۔ بہ اوسس اتھہ موران۔ تھپھ دمہس تہ کتھ تہ کمس۔ اتھۍ منز گیم امۍ سنز پھسرارے کنن۔۔ "میون نگارہ ہے وایہ ہکھ، چونے ناو کھسہِ ہے علمن زِ کیا زبر کردار چھن تخلیق کورمت۔ تتھ چھنے ژھنمت کردار سند نہ بوزُن۔ بیہہ تہ وۅنۍ قلم رٔٹتھ دٕینہِ۔”

فیس بک مشاعرہ جنوری 2015

میہ اوس وعدہ کورمت زِ بہ لیکھہ طرحی مشاعرہ کین غزلن پیٹھ۔ اکس اکس غزلس پیٹھ شعر بہ شعر کینہہ ونن چھہ مشکل، البتہ چھیہ کینہہ عمومی کتھہ پیش۔ و‎ۅمید چھیہ دوستن کھسن یم کتھہ تتھے پاٹھۍ ٹارِ یتھہ پاٹھۍ میہ تہندۍ غزل ٹارِ کھتۍ۔

قاری سندِ حیثیتہ چھس بہ گۅڈنی آہنگ وچھان۔ سہ گوو مطلب زِ غزل چھا میانہِ زیو پیٹھ آرامہ سان کھسان کنہ نہ، پتہ ٲسۍ تن سہ جایہ جایہ پھٹان۔ اگر امہ کین مصرعن ہند آہنگ زیو پیٹھ کھوت، گردان کس صورتس منز نہ بلکہ تلفظ کس صورتس منز چاہے پرنس دوران وقفہ تہِ دنی پین، میون غزل پرنک گۅڈنیک شرط گوو پورہ۔ غزلس منز گژھہِ منظم آہنگ آسن۔ کوتاہ منظم تتھ ہیکن درجہ ٲستھ۔ نقاد سندِ حیثیتہ چھس بہ وزنچ تقطیع وچھان زِ کنہِ جایہ ما چھیہ غزلک وزن ورتاونس منز بل چک گومت چاہے پرنس منز زیو گراے لگہِ یا نہ لگہِ۔ غزلس منز چھہ منظم آہنگ یا کم از کم تقریبا منظم آہنگ، سہ پتہ فارسی ٲسِن یا بدل کانہہ، ضروری۔ وجہ چھہ یہ زِ غزل چھیہ اکھ منظم شعری ہیت یمیک اتھہ روٹ منظم آہنگ بہتر پاٹھۍ کران چھہ۔ یمہ مشاعرہ کہ طرحک وزن اوس فاعلاتن قعلاتن فعلن یُس کاشرِ کہ خاطرہ ہنا مشکل چھہ۔ کاشرِ کہ خاطرہ چھہ اتھ سیتۍ رلون وزن فاعلاتن مفاعلن قعلن زیادہ آسان تکیازِ گۅڈنکس منز چھیہ زہ ژھۅچہ آوازہ اکس جایہ پوتس پتھ یوان۔ امہ کنۍ اگر نہ شاعر وزنہ کین افعالن واقف آسہِ، سہ ورتاوِ یمو منزہ سے وزن یُس کاشرس زیادہ برونہہ ویود تہ سرود آسہِ۔ کینژو شاعرو اوس یۅہے دویم وزن ورتوومت تہ یہ بدل وزن ورتاونس منز ٲسکھ نہ کانہہ غلطی۔ شاید اکھ غزل، یُس پانژو کھوتہ کم شعرن ہند اوس، اوس تیتھ تہِ یتھ منز نہ یمو منزہ کانہہ وزن ورتاونہ اوس آمت بلکہ اوس نہ کانہہ آہنگ زیوِ پیٹھ کھسان ییلہ زن اکس غزلس منز فارسی وزنہ بجایہ کاشر ہیجلۍ وزنک آہنگ اوس۔ ییتہ نس چھہ میون مشورہ زِ چونکہ کُنہِ نتہ کُنہِ منظم وزنک ورتاو چھہ غزلس منز ضروری، اس لیے اگر غزل ونن آسہِ وزن ہیچھن، علمی طور نہ بلکہ ورتاوہ کنۍ، چھہ ضروری۔

mush

ییلہِ غزل آہنگ کہ لحاظہ زیوِ پیٹھ کھوت، بہ چھس قاری سندِ حیثیتہ وچھان زِ امی شاعرن کیا چھہ شعرن منز وونمت، اگر تژھ کانہہ کتھ ونۍ مژ آسین یوس میہ آسانی سان فکرِ تٔر یا فکرِ کھٔژ، بہ چھس واہ واہ کران پتہ ٲسۍ تن یہ کتھ کانہہ مونڈمت خیال۔ مگر نقاد سندِ حیثیتہ چھس بہ وچھان زِ یۅس کتھ وننہ چھیہ آمژ تتھ منز چھا کم سے کم کانہہ ذہانت، سہ چھا دلچسپ، تتھ منز چھا تیتھ کانہہ فکری پہلو یُس میہ معنوی امکانن کن پکناوِ۔ اگر تہِ آسہِ نہ، بہ چھس نہ متاثر گژھان۔ بہ چھس یہ تہِ وچھان زِ کانہہ ویود مضمون چھا دلچسپ اندازس منز وننہ آمت۔ مثلا اوترے دژ میہ مثال:

دلبری ہند یہ ما چھہ کانہہ انداز
حال باون ہیمے ونکھ تل تل

یہ چھہ اکھ ویود مضمون مگر یہ یمہ اندازہ "تل تل” ورتٲوتھ کاشراونہ آمت چھہ، تمہ کنۍ تہ بییہ "یہ ما چھہ” ؤنتھ پننہِ زانکاری پیٹھ شک کرُن زِ کیا پتہ چھہ یہ تہِ ما چھہ دلبری ہند اکھ انداز، یم تہ یتھی نکتہ چھہِ اتھ شعرس منز میانۍ دلچسپی ہرراوان۔ اتھ شعرس منز چھہ تعجب تہِ، شک تہِ تہ سوال تہِ۔ دویمہ مصرعہ کہ "ہیمے” لفظکۍ معنوی امکان تھٲوۍ توکھ تام یک طرفے۔ بہ چھس یہ تہِ وچھان زِ شعرہ کین مصرعن منز کٲژاہ لسانی صفایی، نفاست، صحت چھہ۔ لفظ اگر پانوانۍ واٹھ کھین، زیادہ لفظ ورتاونچ چھیہ نہ ضرورت پیوان۔ بہ چھس وچھان کانہہ بالکلے نوو مضمون یا تجربہ چھا کنہِ شعرس منز پیدہ گومت۔ بہ چھس شعرہ کین رمزن، اشارن، پیکرن، استعارن تہ علامژن تہِ سنان۔ بہ چھس شعرہ چہ موسیقی تہِ سنان۔ بہ چھہ شعرہ فارمہ ہندس کلہم ورتاوس تہِ داد دوان۔

وۅنۍ کروکھ کینہہ شعر پیش یم میہ ذاتی طور کنہِ وجہہ کنۍ پسند آیہ۔ اگر یمن منز تہند کانہہ شعر یا تہندِ پسندک کانہہ شعر آسہِ نہ میہ گژھہِ معافی دنۍ۔ پیٹھمین نکتن پیٹھ گژھہِ غور کرُن مگر میٲنس پسندس تہ ناپسندس گژھہِ نہ زیادہ اہمیت دنۍ۔ میہ چھہ نہ کنہِ ساعتہ مرزا غالب سند شعر تہِ ٹارِ کھسان۔ امہ موکھہ نہ زِ غالبس کیا چھیہ کمی بلکہ امہ موکھہ زِ میۍ اندر چھیہ کیہہ تام کمی۔

چانۍ حالت تہِ بدل ما بوزم
دود ہجرک چھہ دلن سرود کوتاہ
(علی شیدا)

ژھایہ نے کُن ژہ نظر تھاواں چھکھ
قد تہِ مینُن، چھہ گومت تھود کوتاہ
(علی شیدا)

اوش تہ بتہ کھیوو میہ رلٲوتھ شیدا
وٲنسہِ کھیمہا تہ ہودے ہود کوتاہ
(علی شیدا)

ہفت اقلیم چھہ دوریر وۅں دلن
وصلہ کے بریم تہِ بناں سیود کوتاہ
(علی شیدا)

توگ نہ شاید یہ پِلو میۍ لایُن
نتہ اسماں چھہ ونتہ تھود کوتاہ
(شاہد دلنوی)

دود وجودے مکایہ کانڈکۍ پاٹھۍ
پرارِ رودس وۅں نارہ دود کوتاہ
(شاہد دلنوی)

چھم یہ ازلے میہ لیکھتھ ہول تقدیر
بے کرن سیود تہ کرن سیود کوتاہ
(منظور یوسف)

پریتھ اکس چھکھ زہ اچھن منز تیلان
چھکھ ژہ منظور لکن ویود کوتاہ
(منظور یوسف)

واہ یہ شبنم چھلاں گلابس روے
پوز محبت یوہے چھہ سیود کوتاہ
(ہاشم مسعود)

نارہ حسدنہِ دزاں صمد کوتاہ
یی زِ برجناتھ کھوت میہ تھود کوتاہ
(خالد حسین)

آبہ قطرن لیکھن پیوو دریاو
زانہِ قلمے دل تس دود کوتاہ
(منظور خالد)

ٲنہ پھٹرِتھ پانس کر پٲراو
ہاو ذاتس منہ چھکھ شود کوتاہ
(منظور خالد)

میہ نہنوۍ واوہ رنگہِ  سٲری نشاں وچھ
سیکیل تھاویم رچھتھ کانہہ پود کوتاہ
(حمیدہ شاہ اختر)

بہ چھس یہ تہِ وچھان زِ شاعرن کم کم قافیہ چھہِ ورتاوۍ متۍ۔ علی شیداہن چھہِ واریاہ قافیہ ورتاوۍ متۍ یمو منزہ کینہہ برونہہ کنکۍ چھہ نہ۔ شاہد دلنوی ین چھہ مقامی تلفظس فایدہ تلتھ قافین منز نویر پیدہ کرنچ کوشش کٔرمژ۔ کنہِ ساعتہ چھہ کانہہ نوو قافیہ، یُس نہ عام آسہِ یا زیادہ ورتاونہ آمت آسہِ، کانہہ نوو خیال ذہنس منز انان۔ یمن غزلن ہندۍ زیادہ تر خیال یا مضمون چھہِ منڈۍ متۍ۔ یمن منز چھہ نہ کانہہ نویر۔ پریتھ شاعرس پزِ یہ سوچن زِ اگر سہ تہِ ونہِ یہ میہ پتاہ چھہ، میہ آسہِ نہ تمۍ سندس شعرس منز کانہہ دلچسپی۔ اگر سہ تہِ ونہِ یہ تمس پانس پتاہ چھہ مگر یہ آسیس معلوم، ثیقہ پاٹھۍ معلوم، زِ میہ چھہ نہ پتاہ، تسند شعر آسہِ میانہِ خاطرہ دلچسپ۔ اگر شاعر تہِ ونہِ یہ تمس پانس پتاہ آسہِ، تسند شعر آسہِ تمۍ سندِ خاطرہ بے مزہ۔ شاعرس چھہ لامحالہ تہِ ونن یہ نہ تمس پتاہ آسہِ تہ میہ۔ امیک مطلب گوو یہ زِ نویر گژھہِ شاعرس نشی پیدہ گژھن، ادہ واتہِ میہ نش نویر۔ اتی نے کیا چھہ مطالعہ بکار یوان۔ کیا چھہ وننہ آمت تہ کتھہ پاٹھۍ۔ اتی ہیکہِ شاعر وچھتھ تمۍ سندِ خاطرہ کیا گنجایش چھیہ۔ اکثر شعر چھہِ عروضی تہ ہیتی خانہ پری۔ نہ چھہ مضمونس منز نویر نہ وننہ کس اندازس منز تہ نہ لفظن ہندس ورتاوس منز۔

دشمن تہِ گلا میون

azad

اتھ کن اوس نہ کٲنسہِ ظۅن زِ عبدالاحد آزادن چھہِ سیٹھا وزن ورتٲوۍ متۍ۔ مہجورن چھہِ نہ تیتۍ وزن ورتیمتی۔ رسول میرس پتہ چھہ آزاد گۅڈنیک شاعر یمس نش اسہِ عروضی تنوع میلان چھہ۔ بہ اوسس اتھ پیٹھ لیکھن یژھان تہ فونس پیٹھ اوسس امیک کٲنسہِ کٲنسہِ نش ذکر کران۔ پتہ نیو رفیق رازن آزاد سندین وزنن پیٹھ اکھ مضمون لیکھتھ۔ مگر آزاد نس وزنہ ورتاوس متعلق چھیہ بییہ تہِ واریاہ کتھہ یم نہ راز سندس مضمونس منز چھیہ۔ ییتہِ نس چھیہ نہ تمن ہنز کتھ، البتہ چھس بہ ہمیشہ یہ سوچان زِ یہ آزاد کوتاہ ذہین چھہ اوسمت۔  کینہہ شعر یم میہ پسند چھہِ چھہِ پیش:

جہلہ کُے پردہ ژٹن والۍ یوان کالہ پگاہ
علمہ کُے پردہ ژٹن والۍ یوان یژکالۍ

یہ شعر ونن وول چھہ نہ معمولی انسان۔ امس کوت پیٹھ چھیہ نظر ٲسمژ۔ جہلک پردہ ژٹن چھہ آسان، علمک پردہ ژٹن چھہ نہ آسان۔ یہ پردہ ژٹن وول گژھہِ پزۍ پاٹھۍ تمی سندی کتھہِ پیغمبرِ خدا آسن۔

یہے کتھ چھن بییہ یتھہ پاٹھۍ ونمژ:

تہِ زانن تم یمو عبرت امیک روٹ
چھہ اتھ گاشس اندر کوتاہ انہِ گوٹ

٭٭٭٭

وچھو شعر:

کمہِ ساعتہ کٔڈتھ میانۍ ہوس میانۍ تمنا
سورے ژہ زانکھ پانہ بے پروایہ ونے کیا

٭٭٭٭

شہریار سند اکھ شعر چھہ یُس سیٹھا مشہور گوو:

ہربار پلٹتے ہوئے گھر کو یہی سوچا
اے کاش کسی لمبے سفر کو گئے ہوتے

وچھو آزاد کیا ونان:

پردہ ژٹتھ نیرہ ہا دردہ نین پھیرہ ہا
تس تہ میہ تانۍ منزلاہ دور وتھا آسہہے

٭٭٭٭

وچھو شعر:

تس تہِ گمتۍ یم ستم آسہِ ہنے زیادہ کم
ضایع گژھان دمبدم میون صدا آسہہے

٭٭٭٭

وچھ میہ خدا زانونۍ ساسہ بدی عقلمند
پان پنن زانہ وُن کانہہ تہِ اکھ آسہِ ہے

٭٭٭٭

بہ منگہ پننس  خداے پاکس بروز محشر الگ مکانا
بہن تہ کھیون چیون شونگن تہ عشرت اگر یتُے یوت چھہ جنتس منز

٭٭٭٭

سیٹھا زٲنتھ میہ زونم کینہہ نہ زونم
لٔبتھ تیروکماں رووم نشانہ

٭٭٭٭

ودنس میٲنس اسونۍ ترایے
غم سے منز چھہ شادیانے میون

٭٭٭

غالب ونان
دے اور ہی دل ان کو۔۔۔

آزاد ونان

ونان یم دورِ چھم جاہل
دتکھ انسانہ سند ہیو دل
دہکھ نے اچھ دتکھ ٹٲری
بہ نو ذرہ عشقہ بیماری
یاتہ وچھن نتہ تھاون اچھے ؤٹتھ۔

٭٭٭٭

یہ عالم حسرتک خارا چھہ میٲنس گلشنس اندر
سہ عالم وحشتک داغا چھہ میٲنس دامنس اندر

٭٭٭٭

غلامی منز تہِ آزادس چھیہ آزادی خیالن منز
ییس ما ژکھ خدواندس پییس ما دین حساب ٲخر

٭٭٭٭

یہ وچھو شعر۔ ہے ہے کیا کتھ اوس ونان کتھ وقتس:

چھس دوستی ہند دوس یہ دشمن میہ کریم کیا
یتھ دوستی ہنزِ وارِ منز دشمن تہِ گلا میون

کاش علامہ اقبالن تہِ آسہ ہن یژھے کتھہ کرِ مژہ۔ کاش آزادس نش فن زیادہ پہن آسن اوسمت، پتہ تسندۍ خیال!  آزاد نہِ شاعری منز چھہ وحدت عالم انسانی، یمیک نہ کشیرِ منز کانہہ تصور ہیکہِ کٔرتھ۔  عام طور چھہ لوکھ سوچان زِ آزاد اوس مذہب بیزار یا خدا بیزار مگر تمۍ سنزِ شاعری منز چھیہ نہ تژھ کانہہ کتھ۔ تسند کلام چھہ بغور پرنچ ضرورت۔

وحدت حق اوس کُنرک ابتدا
وحدت انسان کُنرک انتہا

واریاہ دوست ما دپن زِ یہ چھہ اکھ خالص بیان تہ یہ ہیکہِ نہ شاعری بٔنتھ۔ تم چھہِ اکہ بجہ غلط فہمی ہندۍ شکار۔ پریتھ شعر چھہ نہ علامت تہ استعارہ تہ پیکر آسان۔ شاعری چھیہ ذہانت تہ فطانت تہِ۔ اکھ غیر معمولی بیان تہِ۔ اکس غیر معمولی اندازس منز یتھہ پاٹھۍ اکھ عام کتھ وننہ ییہِ، تتھے پاٹھۍ ہیکہِ عام اندازس منز غیر معمولی کتھ وننہ یِتھ۔ آزاد سند یہ شعر چھہ بظاہر سادہ مگر اتھ منز یۅس کتھ چھیہ وننہ آمژ سۅ چھیہ اکس فلسفس تہ اعتقادس کن اشارہ کٔرتھ تمیک اکھ غیر معمولی کونہ گاشراوان۔ غالب سندِ یمہ شعرکۍ پاٹھۍ چھہِ کہیا شعر یم سادہ بیان چھہِ مگر یمن منز اکھ ڈرامایی صورت حال پیدہ کرنہ چھہ آمت:

ہر ایک بات پہ کہتے ہو تم کہ تو کیا ہے
تم ہی کہو کہ یہ انداز گفتگو کیا ہے

گویا اکھ کتھ یا خیال غیر معمولی یا دلچسپ اندازس منز بیان کرنہ علاوہ چھہ شاعری ہند پسندیدہ آوریار غیر معمولی تہ دلچسپ کتھن ہند بیان رود مت۔ امی منزہ چھیہ غزلچ مضمون آرایی تہ خیال بندی بیترِ درامژ۔ آزادنہِ شاعری منز چھہِ تتھۍ خیال تہ تژھہ کتھہ میلان یم سیٹھا دلچسپ چھیہ تہ عام کاشرۍ سندِ خاطرہ بہرحال غیر معمولی تہِ چھیہ۔

بییہ چھیہ بیاکھ کتھ۔ شعری شخصیت تہ شعری بیانیہ چھیہ شاعر سنز کلہم شاعری آسان۔ مہجور اگر اسۍ الگ الگ شعرن مدنظر مۅلوتھ ہیکون، مگر آزاد سند شعری مۅل چھہ تسنزِ کلہم شاعری ہند نتیجہ۔ آزادن کرۍ واریاہ شاعر متاثر یمن منز مہجور تہِ چھہ حالانکہ آزاد اوس تمس دوست علاوہ وۅستاد تہِ تصور کران۔ جدید شاعرن منز چھہ تسند اثر ساروے کھوتہ زیادہ امین کاملس منز درینٹھۍ یوان۔ آزاد چھہ ترقی پسند فلسفہ سیتۍ متاثر گومت مگر تسنزِ شاعری منز چھہ امہ فلسفہ کھوتہ زیادہ انسان پسندی تہ وحدت عالم انسانی یک جذیہ زیادہ کارفرما۔ تمۍ سنز نظر چھیہ تتھ کُنرس پیٹھ یُس انسان سندِ وجودک انتہا چھہ۔

٭٭٭٭

ننۍ راونے آیوس کُنیر چون گنرس منز
شترن تہ مترن زہرہ کھوتہ ٹیوٹھ لوگ یہ شکر میون

٭٭٭٭

اکہ لٹہِ دیت میہ طرحی مشاعرہ خاطرہ اکھ مصرعہ، وچھو پورہ شعر:

وہم ییلہ عادت سپد دوپہس یقین
آسمانن دامنس تل رٔٹ زمین

٭٭٭٭
بیاکھ شعر بوزو:

عقلہِ ییلہِ دلہ کیو حبابو لود خمار
غیب کس پردس اندر نقش و نگار

٭٭٭٭

خارہ خارو سیتۍ سمسارک بساو
پانہ سے کھرۍ لد پنکۍ پاٹھۍ ولنہ آو

٭٭٭٭

وچھو یہ شعر:

کُنے چھہ دفتر کُنے فسانہ مگر وچھتھ گردش زمانہ
بنان آسمان چین کتابن چھیہ آسمانی کتاب دشمن

اکس اکس لفظس چھیہ سننچ ضرورت۔ وچھتھ گردش زمانہ!

٭٭٭٭

دوگنیارن مارۍ کاشرۍ یے
ہیچھناوتکھ کنرُک سوز
یم تہِ گژھہن تارہ ترۍ یے
سوندرۍ یے بوزی میانۍ زار

٭٭٭٭

باغ سون راوہ روو کھرۍ لد گاسو
ینہ پیٹھہ بازۍ گار باغوان آے
تی ہیوچھ عامن تی ہیوچھ خاصو
پانوانۍ کاسو پننۍ نیاے

٭٭٭٭

بستی ین شنیاہ کور ونواسو
لولہ چہ پھلیے ترٲوکھ ہاے
ژور ہوۍ کرۍ یمو خرقو تہ عاصو
پانوانۍ کاسو پننی نیاے

٭٭٭٭

چھہ پیومت راتہ کریلن راتہ موغلن غم تہ ماتم کیا
یہندے عیشہ باپتھ نیرِ ہے نا آفتاب ٲخر

٭٭٭٭

ٲخرس پیٹھ:

کنہِ وزِ پاوے یاد سۅندرۍ یے
آزادنۍ سخن وری یے
کاشرین مانان چھہ نہ کاشرۍ یے
بٹہ کورۍ مارۍ منز سۅندرۍ یے

یتھی کنہِ وندہ

win

یتھی کنہِ وندہ

(منیب الرحمن)

 

خیمہ چھیہ دتھ کوچس منز تٍر
یمہ وندہ پھٔٹ سوچس منز تٍر

چندس، جندس، دندس منز
یمہ وندہ تٍرِ پیوو بتھہِ دین کنز

موژ تٍرِ کۅکُر ہیو جسمک کٹھ
یمہِ وندہ ژایہ زُوس تاں نٹھ

باسان چھہ یتھی کُنہِ وندہ، یمہ وندہ
لگہِ دۅشونۍ تٍرِ کنڈین ہند رندہ

کنہِ کنہِ گیہ یمہِ وندہ  تٍر تٔرتھ
یتھی کُنہِ وندہ اسۍ گژھو مٔرتھ

 

شعری فارمہِ ہنز فنی تنظیم

رحمن راہی سنز اکھ کتاب چھیہ "شعر شناسی” یتھ منز کاشرین بآتن پیٹھ الگ الگ تنقیدی تبصرہ لیکھنہ چھہِ آمتۍ۔ تنقیدی تبصرہ کس ناوس پیٹھ چھہ اکثر بٲتن ہند معنی تفصیلہ سان بیان کرنہ آمت۔ اتہِ نس چھہ سوال پیدہ گژھان شعر شناسی کتھ ونو؟ شعرن ہند معنی بیان کرن یودوے اکھ بنیادی قدم ہیکہِ ٲستھ، کیا شعر شناسی چھا شعرن ہند معنی بیان کرنس تامے محدود؟ یم کاشرۍ بٲتھ کتابہِ منز شامل چھہِ تم چھہِ زیادہ تر لوکہ بٲتھ یعنی تم چھہِ نہ غالب سندۍ خیال بند شعر زِ تشریح ہنز پییکھ ضرورت۔ نہ چھہ یمن منز کانہہ مشکل لفظ یا تلمیحہ یمن ہنز وضاحت ضروری بنہِ۔ یہ کتھ چھیہ اہم تہ یمیک احساس اتھ کتابہِ منز بالکل چھہ نہ گژھان چھیہ یہ زِ لکہ بٲتن ہنز شعریت چھیہ نہ تمن منز موجود خیالن اندر۔ مثالہ پاٹھۍ نمون اسۍ اکھ لوکہ بٲتھ یُس اتھ کتابہِ منز شامل چھہ تہ وچھو زِ راہی کتھہ پاٹھۍ چھہ اتھ بٲتس پران۔ گۅڈنیتھ کرون یہ بٲتھ تتھے پاٹھۍ درج یتھہ پاٹھۍ یہ اتھ کتابہِ منز چھہ:

ہن ہن چھم لولہ چانہِ بٲرتھ
زۅلہ چھیم نو سۅندٲرے سۅندرے

تیر مژگاں دتۍ تھم دٲرتھ
گٲمہ جگرس پنجرے پٲنجرے
دٲدۍ لد چھس کوت ہیکہ لٲرتھ
زۅلہ چھیم نو سۅندٲرے سۅندرے

وژھہِ وٲنجہِ ہاوے مژرٲوتھ
پہۍ پن زٲن ہرٲیو ہریو
مژھہِ مژھ بند زن گژھے لٲرتھ
زۅلہ چھیم نو سۅندٲرے سۅندرے

گچھہ کُٹھہِ نے تھاوے وتھرٲوتھ
لچھہ ناویو مندورے سانہِ بیہہ
اچھہ دٲر زن روزے پٲرٲوتھ
زۅلہ چھیم نو سۅندٲرے سۅندرے

لالہ گومے باغہ منزہ نیرتھ
پوش لاگٲس گۅندٲرے گۅندرے
کینہہ نہ منگہ سے ییم نا پھیرتھ
زۅلہ چھیم نو سۅندٲرے سۅندرے

پانژن شین صفحن ہندس تبصرس منز چھہ راہی معنی بیان کرنہ علاوہ زہ کتھ بٲتس متعلق ونان۔ اکھ امہ کس قافیس متعلق تہ بیاکھ امہ کین بندن ہنزِ ترتیبہِ متعلق، سہ تہِ تمن منز بیان کرنہ آمتین وٲرۍ داتن ہندِ منطقہ کہ تعلقہ۔
وچھو وۅنۍ راہی کیا چھہ فرماوان:

ss

"زندگی ہند کن تہ کیول مدعا چھہ تس وۅنۍ مدنوارس سیتۍ اکھ بے پھروک میل۔ مگر یہ روایتی موضوع یمہ آیہ ورتاونہ آمت چھہ سہ ورتاو چھہ تیوت خۅش آہنگ تہ بے شونک زِ بوزن وٲلس زن چھیہ مٲنتھر لگان تہ تس چھہ نہ بٲتس منز موجود کینژن فنی خامی ین کن تہِ سہل سہل ظۅن گژھان۔” (صرف چھہ ونان "یمہ آیہ ورتاونہ آمت چھہ”۔ یہ چھہ نہ ہاوان زِ کمہ آیہ چھہ ورتاونہ آمت۔)

بہرحال، گویا راہی یس چھیہ اتھ بٲتس منز فنی خامی نظرِ گژھان۔ وضاحت چھہ کران:

"بٲتس منز ورتاونہ آمتۍ قافیہ چھہِ امچ ٹاکارہ مثال۔ ہرگاہ قافیہ بندی ہندین کلاسیکل اصولن کن گژھو تیلہِ زن گژھۍ نہ مثالے دٲرتھ تہ لٲرتھ ہوین لفظن سیتۍ نیرتھ، پٲرٲوتھ ہوۍ لفظ ہم قافیہ گنزراونہ ینۍ۔”

مگر سیتی چھہ ونان اتھ بٲتس "منز باونہ آمتۍ جذبات چھہِ تیتۍ وتشل زِ یہ فنی بے قاعدگی چھیہ نہ کانہہ عیب باسان۔” حقیقت چھیہ یہ زِ فنی خامی چھیہ فنی خامی تہ کنہِ تہ صورتس منز ییہ یہ عیب گنزراونہ یوت تام نہ امیک کانہہ جواز یا ضرورت یا مجبوری آسہِ۔ (یم وتشل جذبات چھہ تمام لوکہ شاعری منز، اتھ منز کیا خاص کتھ چھیہ یمہ کنۍ قافیس کن ظۅن چھہ نہ گژھان، تہِ گوژھ ونن۔)

اکہ طرفہ چھہ ونان زِ یہ چھیہ فنی خامی تہ بییہ طرفہ چھہ ونان یہ چھہ نہ عیب، وجہ چھہ بیان کران ز "بوزن وول چھہ نہ اتھ ظۅنسے گژھان۔ میہ وون بوزن وول۔ پرن والۍ سنز کٔر نہ میہ کتھ تکیازِ گیون بٲتن گژھہِ نہ چھٲپی نظمن ہنز نظر کرنۍ۔”

گویا اگر نہ اتھ اچھو سیتۍ وچھو، قافیچ خامی چھیہ نہ محسوس گژھان۔ مگر راہی چھہ نہ اتھ بٲتس اچھو سیتۍ تہِ سنان، بوزتھ چھہ نہ سوالے۔ گۅڑنچی کتھ چھیہ یہ زِ بٲتھ چھہ تتھ ہیتس (فارمہِ) منز یتھ اسۍ وژن ونان چھہِ۔ یہ ژینن چھہ ضروری۔ راہی چھہ اتھ بٲتھ ؤنتھ امہ چہ فارمہ نظر انداز کران حالانکہ روایتی شاعری منز چھیہ فارم اہم۔ بٲتھ چھیہ نہ کانہہ شعری ہیت، نہ لفظ منظومہ یُس راہی اکثر ورتاوان چھہ۔ اگر امہ بٲتچ ہیت مدنظر روزِ، امچ تنظیم تہِ ییہ برونہہ کن۔ فن چھہ فارم ورتاونک طریقہ تہ سلیقہ۔ یوت تام نہ فارم بدِ ییہ کڈنہ، فنچ کتھ کتھہ پاٹھۍ سپدِ۔ قافین منز بے قاعدگی وچھنک وجہ چھہ یہ زِ راہی چھہ اتھ بٲتس نظمہ ہندۍ پاٹھۍ پران تہ ہیرہ پیٹھہ بۅن تام کنے قافیہ تصور کران۔ دویم غلطی یۅس راہی کران چھہ، سۅ چھیہ یہ زِ سہ چھہ بٲتہ کین قافین "قافیہ بندی ہندین کلاسیکل اصولن” ہنزِ نظرِ وچھان؟ کم کلاسیکل اصول؟ تہ چھیہ نہ پتاہ۔ دراصل چھہ تس برونہہ کنہِ غزلہ کین قافین ہنز اصول بندی۔ حالانکہ قافیہ چھہِ غزلہ علاوہ مثنوی ین منز تہِ ورتاونہ آمتۍ۔ تم گژھن وچھنۍ تہ پتہ گژھہِ کتھ کرنۍ۔

وژنس ہیکن الگ الگ بندن منز الگ الگ قافیہ یِتھ۔ اتھ بٲتس پیٹھ اگر سرسری نظر تہِ تراوو، الگ الگ قافیہ نیرن ننۍ۔ پریتھ بند کس گۅڈنکس تہ تریمس مصرعس چھہ کنے قافیہ۔ الگ الگ بندن چھہ الگ الگ قافیہ۔ مگر راہی چھہ اتھ ہیرہ پیٹھہ بۅن تام اکوے قافیہ زٲنتھ پران۔ حالانکہ

گۅڈنکس بندس چھہ /دٲرتھ/ تہ /لٲرتھ/ قافیہ۔
دویمس بندس چھہ /مژرٲوتھ/ تہ لٲرتھ/ قافیہ۔
تریمس بندس چھہ /وتھرٲوتھ/ تہ پٲرٲوتھ/ قافیہ۔
ژورمس بندس چھہ /نیرتھ/ تہ /پھیرتھ/ قافیہ۔

قافیک تعریف کیا چھہ؟ کتابی اصطلاحن ہندس گھن چکرس منز گژھنہ ورٲے، تکرار تہ تنوع۔ یوہے چھہ قافیک اصول۔ لفظہ چین ہشن آوازن ہند تکرار۔ تکراری آوازِ برونہہ ینہ واجنہِ آوازِ ہند تنوع۔ مثلا گۅڈنکہ بند کین قافین منز چھہ تکراری حصہ /ٲرتھ/ تہ تنوع وول حصہ چھہ /د/ تہ /ل/۔

وچھو وۅنۍ دویمہ بندک قافیہ امی اصولہ مطابق۔ تکراری حصہ چھہ /اِتھ/ (یعنی زیر تہ تھ) تہ متنوع حصہ چھہ /و/ تہ /ر/۔

ژورمہِ بندک قافیہ چھہ تکراری حصہ /یرتھ/ تہ متنوع حصہ /ن/ تہ /پھ/۔

تریمس بندس چھہ نہ قافیہ امہ اصولہ کنۍ مکمل پاٹھۍ کارگر، مگر اگر گۅڈنیک لفظ زیٹھراوون تہ /وتھرٲوتھ/ بدلہ /وتھٲرٲوتھ/ پرون (یہ چھہ بقول راہی گیون بٲتھ)، یہ قافیہ تہِ چھہ صحیح۔ /ٲرٲوتھ/ چھہ تکراری حصہ تہ /تھ/ تہ /پ/ متنوع حصہ۔ راہی ییلہ یمن بٲتن منز اکثر لفظ زیٹھراوان چھہ (مثلا پوش لاگس بدلہ پوش لاگٲس، بٔرتھ بدلہ بٲرتھ)، یہ لفظ کیازِ ہیکون نہ زیٹھرٲوتھ /وتھرٲوتھ/ بدلہ /وتھٲرٲوتھ/ پٔرتھ؟ بیاکھ کتھ چھیہ یہ زِ یم بٲتھ چھہ سینہ بہ سینہ پکان تہ یمن ہندۍ لفظ تہ بند تام چھہ تبدیل سپدۍ متۍ۔ امہ بٲتک یہ بند تہِ چھہ باسان اتھ جوڑنہ آمت۔ ثبوت ییہ برونہہ کن۔

کاشرِ لکہ شاعری منز کمہِ کشادگی سان چھہ قافیہ ورتاونہ آمت، تمیک اندازہ گژھہ "شعر شناسی” ہندس مصنفس میانہِ کھوتہ زیادہ آسن۔ مثالہ خاطرہ وچھون حبہ خاتونہِ ہند یہ وژن:

پھۅلہ ونہِ زیٹھے چھے میون سالو
لالو از وۅلو مالین میون

اتھ وژنس منزچھہِ یم لفظ ہم قافیہ گنڈنہ آمتۍ:

سالو، شولو، ڈانبلو، ڈلو، بلبلو، للو، لالو، ازلو، پِلو، حالو، مثالو

یتھے پاٹھۍ حبہ خوتونہِ ہندے بیاکھ وژن:

وار چھم نہ میلنس وٲروِ چھس گرے
وۅں پراریو پوشہِ تھرے تل

اتھ منز چھہ پھرے تہ کرے لفظن سیتۍ دارے گنڈنہ آمت۔ بییس پاٹھس منز پھرے تہ کرے لفظن سیتۍ بلے گنڈنہ آمت۔

بییس وژنس منز:
کاوۍ وہیونم ارۍ ننہِ نہے
از ییہ یار بہ ناوسے

نہے لفظس سیتۍ عنبرے تہ روستِس لفظس سیتۍ لٔجِس گنڈنہ آمت۔

بیاکھ مشہور وژن چھہ:
ژہ کمیو سۅنہِ میانہِ برم دتھ نیونکھو
ژیہ کہیو گٔیی میانۍ دے

اتھ منز چھہ تریمس تریمس مصرعس منز اندس پیٹھ قافیہ یوان۔ یم لفظ چھہ ہم قافیہ ماننہ آمتۍ:
یوان، پاوان، ہاران، چھاوان، شہلاوان، مازان، یوان

گویا کاشرِ لکہ شاعری ہنز قافیہ بندی چھیہ نہ اردو تہ فارسی غزلہ چہ "کلاسیکل قافیہ بندی” مطابق۔

زیر بحث بٲتک فنی زاوۍ جار چھہ یہ زِ بندن منز الگ الگ قافیہ ورتٲوتھ تہِ چھہ سارنے قافین ہند آہنگ ہیوے تھٲونہ آمت۔ وچھو امہ بٲتک بیاکھ فنی پہلو یس راہی بالکل نظر انداز چھہ کران بلکہ یتھ کن تسنز نظر چھیہ نہ گمژے۔

گۅڈنکہ تہ تریمہ مصرعہ کہ قافیہ علاوہ چھہ دویمس دویمس مصرعس منز تہِ قافیہ اننہ آمت۔ مثلا سۅندٲرے سۅندرے، گۅندٲرے گۅندرے، بیترِ۔ اتھ قافیس پیٹھ تہِ ہیکہِ دھوکہ گژھتھ زِ یہ چھہ وژنس منز ہیرہ بۅن کنے، حالانکہ حقیقت چھیہ یہ زِ یہ قافیہ چھہ دویمہ دویمہ مصرعہ کین اکھ اکس سیتۍ ینہ والین لفظن منز پانوانۍ قایم۔ یہ چھیہ امہ بٲتچ فنی خوبصورتی۔ یہ قافیہ چھہ متنوع لفظہ تکرارس پیٹھ مشتمل۔ سۅندٲرے/سۅندرے، ہرٲیو/ہریو، گۅندٲرے/گۅندرے۔ یمن لفظن پیٹھ نظر ترٲوتھ چھہ پیٹرن (ترتیب) نون نیران۔ گۅڈنکس لفظس منز چھہ دویمہ لفظک مصوتہ /زبر/ زیٹھرٲوتھ /ٲ/ بناونہ آمت۔ یہ پیٹرن وچھتھ ہیکو اسۍ ونتھ زِ راہی چھہ یہ مصرعہ غلط نقل کران:

گٲمہ جگرس پنجرے پٲنجرے

نہ صرف چھہ راہی لفظ اکھ اکۍ سنزِ جایہ لیکھان بلکہ چھہ سہ زیوٹھ مصوتہ غلط جایہ تھاوان۔ پنجٲرے بدلہ چھہ پٲنجرے دوان۔ وجہ یہ زِ بٲتہ کین لفظن تہ قافین ہنز کمپلیکس تنظیم چھیہ نہ تس درینٹھی آمژ۔ صحیح مصرعہ گژھہِ آسن:

گٲمہ جگرس پنجٲرے پنجرے

دویمس دویمس مصرعس منز چھہ لفظن ہند یہ التزام قایم سواے تریمس بندس منز یتھ منز یتھہ پاٹھۍ پیٹھہ وننہ آو گۅڈنکس تہ تریمس مصرعس منز قافیہ تہِ کارگر چھہ نہ۔ صاف چھہ زِ یا تہ چھیہ زبانۍ روایژ منز اتھ بندس تبدیلی سپزمژ نتہ چھہ یہ بند جوڑنہ آمت۔ یمۍ شاعرن بٲتس منز ییژاہ پیچیدہ تنظیم ورتٲومژ آسہِ تس آسہِ ہے نا قافیچ فنی خامی دور کرنس کن کانہہ ظۅن گومت؟

ٲخرس پیٹھ فن چھہ فارمہ ہندس ورتاوس منز، لفظن ہندس ورتاوس منز، خیالاتن ہندس ورتاوس منز (خیالن منز نہ بلکہ تہندس ورتاوس منز)، گۅڈنچین دۅن صورتن منز چھہ امہ بٲتک فن ظاہر۔ راہی چھہ صرف معنی بیان کران یُس پریتھ کٲنسہِ ہندِ خاطرہ ٹاکارہ چھہ تہ اکھ موضوعی یا شخصی کارگزاری چھیہ۔ لہذا چھہ نہ تہنزِ معنی بیانی پیٹھ میہ کانہہ اعتراض۔ میون یہ پوسٹ سمجھنہ خاطرہ پٔریو "شعر شناسی” منز امہِ بٲتک تبصرہ صفحہ 182 پیٹھہ186 تام۔

امہ وژنہ کس فنی پہلوس پیٹھ راہی سند اعتراض چھہ بے معنی بلکہ چھہ نہ امیک فنے تس درینٹھۍ آمت۔

بٲتہ کس ترتیبس متعلق چھہ راہی ونان زِٲخری بند چھہ "ٲخرس پیٹھ گیونہ بجایہ منزے پیش کرنہ یوان۔” امہ پتہ چھہ ونان زِ "منطقی حسابہ اگر وچھو تیلہِ گژھہِ ٲخرک یوہے بند زنجورِ ہند گۅڈنیک کور آسن مگر شاعری منز چھیہ منطقی ترتیبہِ کھوتہ زیادہ جذباتی ترتیبے کارفرما آسان۔” یہ چھہ نہ ونان زِ یہ جذباتی ترتیب کتہِ آیہ۔ اگر بٲتھ اکہِ ترتیبہ گیونہ یوان چھہ، راہی کیازِ اتھ پننۍ ترتیب دِتھ "حذباتی ترتیب” ناو دوان؟

یہ بٲتھ چھہ امین کاملن تہِ "لولہ نغمہ” ناوۍ پننہِ کتابہِ منز دیتمت۔ تمۍ چھہ تمی ترتیبہِ یہ بٲتھ دیتمت یمہ ترتیبہِ یہ گیونہ یوان چھہ۔ راہی سند دیتمت ٲخری بند چھہ کامل سنزِ ترتیبہِ منز بٲتک گۅڈنیک بند۔ کامل چھہ نہ راہی سند دیتمت گۅڈنیک بند دوانے۔ تمۍ چھہِ ترییے بند دتۍ متۍ۔ ممکن چھہ کاملس آسہِ یہ بند پیومت نتہ ما آسین نہ یہ علاوہ بند گیونس منز بوزمت۔

شاعری ہند ترجمہ تہ تعریف: منیب الرحمن بنام رابرٹ فراسٹ

راتھ (20 دسمبر) سپزہ زہ کتھہ۔ سیٹھا ذہین فیس بک یوزر سبرین ملک کھول رابرٹ فراسٹ سند مشہور زمانہ مقولہ پننس والس۔ مقولہ چھہ "شاعری چھیہ تہِ یہ ترجمس منز راوان چھہ۔” میہ وچھ یہ تہ کٔرم لفظن گندتھ اتھ مقولس منز تبدیلی تہ کھٲلم دوشوے فراسٹ سند مقولہ تہ پنن لفظہ گیند پننس والس۔ میون مبدل اوس ونان: "شاعری چھیہ تہِ یہ ترجمس منز راوان تہ لبنہ یوان چھہ۔” اتھ پیٹھ ہیتِن کمینٹ ینۍ۔ تقریبا سٲری تی ونان یہ فراسٹن وونمت چھہ۔ مظفر عازم صٲبس اگر کنہِ پوسٹس سیتۍ برابری آیہ نہ تم چھہِ نہ تتھ لایک کران۔ تمو کور کمینٹ زِ امہ برونہہ زِ تم کرن اتھ لایک، منیب الرحمن یا بییہ کانہہ ہیکیا اتھ تبدیل شدہ شکلہِ مثال دتھ واش کٔڈتھ۔ عازم صٲب چھہِ تجربہ کار، تہ سینیر ترجمہ کار تہ یمن چھہ ترجمہ خاطرہ ساہتیہ اکاڈمی ہند ایوارڈ تہِ میولمت۔ بہ چھس اکثر گۅڈہ کتھ ونان تہ پتہ تمیک مطلب سوچان۔ میہ دوپ نسا وۅنۍ یہ بہ لیکھتھ گوس تہ تہِ،امیک دفاع کرن چھہ ضروری تہ لوگس سوچنہِ زِ فراسٹ سندِ مقولک یہ میون لفظہ گیند کیا کیا ہیکہِ بٲوتھ؟

بیاکھ کتھ سپز اتھۍ دوران یہ زِ فاروق شاہین سند مسیج ووت زِ تمن یس وعدہ میہ رسالہ خاطرہ مضمون دنک کورمت اوس، سہ کر گژھہِ پورہ۔ میہ اوس اقرار کورمت زِ اکس ہفتس منز سوزہ شاعری متعلق کانہہ مضمون (حالانکہ میہ چھہِ نہ مضمون لیکھنی تگان)۔ کینہہ اوسم نہ فکرِ تران زِ لیکھہ کیا۔ یم دۅشوے کتھہ اکی ساعتہ سپدنہ کنۍ آو میہ خیال زِ چھنا صلاح بہ لیکھہ پننس اتھۍ لفظہ گندس متعلق کینہہ سطرہ۔

٭٭٭٭
عام طور چھیہ یہ شکایت کرنہ یوان زِ ترجمس منز چھیہ شاعری راوان۔ اگرچہ اتھ منز واریاہ صداقت چھیہ مگر امیک مطلب چھہ نہ یہ زِ اسۍ کیا ہیکو نہ ترجمہ کٔرتھ یا ترجمس منز کیا چھیہ نہ شاعری ممکن۔ ایاز رسول نازکین اوس کمینٹ کورمت زِ شاعری چھیہ دراصل خاموشی یۅس اظہارس منز راوان چھیہ۔ یہ خیال چھہ شاعرو وزِ وزِ ورتوومت زِ زبان چھیہ اظہارس برونہہ کنہِ کم پیوان۔ مثلا کچھ اور چاہئیے وسعت مر ے بیاں کے لئے۔ اتھ منز کٲژا صداقت چھیہ۔ غالبن یہ کینژھا وون تمہِ علاوہ تہِ اوسا کینہہ یہ نہ سہ زبانۍ ہنزِ تنگی کنۍ ؤنتھ ہیوک، تہِ ماپنہ خاطرہ چھہ نہ اسہِ نش کانہہ پیمانہ، تاہم چھہ یہ خیال صحیح ماننہ یوان زِ زبانۍ چھیہ پننہ حدبندی۔ مگر امہ باوجود چھیہ نوین تخلیقی جہان ہنز دریافت شاعری منز جاری۔ ترجمک تہِ چھہ یۅہے حال۔ شکایت بجا مگر ترجمہ کاری چھیہ جاری تہ دنیاہچ واریاہ شاعری چھیہ ترجمہ کہ ذریعے اسہ تام واتان۔

Robert Frost(رابرٹ فراسٹ اکھ عظیم فن کار)

شاعری ہند اکھ تعریف چھہ نہ ممکن تکیازِ شاعری کتھ ونو اتھ متعلق چھیہ نہ بڈین بڈین نقادن ہنزو کوششو باوجود کانہہ حتمی را‎ے قایم سپزمژ۔ رابرٹ فراسٹ چھہ شاعری تتھ چیزس ونان یُس نہ اکہ زبانۍ پیٹھہ بییس زبانۍ منز منتقل سپدِ۔ اکھ مجرد تعریف۔ ظاہری سوتھرس پیٹھ چھہِ نہ لفظن ہند پننہِ زبانۍ اندر اشارتی مۅل، وزن تہ آہنگ، زبانۍ ہندین لفظن ہند مخصوص صوتی آہنگ، ردیف قافیہ بیترِ ترجمس منز منتقل سپدان۔ فراسٹ اوس پابند تہ مقفی شاعری کران۔ شاعری ہندۍ تم چیز یم زبانۍ یا کنہِ مخصوص فارمہِ تابع آسن چھہِ نہ ترجمس منز منتقل سپدان۔ چونکہ از کل چھہِ نہ واریاہ ادیب (مثلا رحمن راہی، شفیع شوق، بیترِ) شاعری خاطرہ یم چیز ضروری زانان لہذا کیا تمن چیزن ہنز منتقلی چھا ممکن یم یمو خصوصیتو بغیر لیکھنہ آسن آمتۍ؟ اگر اتھ تہِ جواب انکارس منز آسہِ، گویا ترجمس منز چھہِ نہ صرف یمے ظاہری چیز یم راوان چھہِ، بلکہ یمو علاوہ تہِ واریاہ کینہہ یس کنہِ تجربس یا متنس شاعری بناوان چھہ۔ ترجمس منز یُس چیز منتقل کرُن سہل چھہ، سہ چھہ خیال یعنی تفصیلی معنی۔ چونکہ نظمہِ منز چھہ خیالک دخل غزلہ کس شعرس مقابلہ زیادہ، امیک ترجمہ چھہ نسبتا آسان۔ نظم چھیہ اکثر خیالس منطقی زیچھر دوان یعنی اتھ منز چھہ خیالک پوچھر یمہ کنۍ یژھہِ نظمہِ ہند خیال منتقل کرن ممکن سپدان چھہ۔ شانتی ویر کولن اوس کمینٹ کورمت زِ شاعری ہند پوز امتحان چھہ ترجمہ۔ تہند مطلب چھہ شاید یہ زِ نظم گژھہِ ترجمہ کس امتحانس منز کامیاب سپدنۍ۔ واریاہ نظمہ چھیہ تم یم پزۍ پاٹھۍ ترجمس لایق آسان چھیہ۔ ازکل چھیہ زیادہ تر یژھے نظمہ لیکھنہ یوان۔ یعنی تم نظمہ یم ترجمہ کٔرتھ بییس زبانۍ ہندین پرن والین ہندِ خاطرہ تہِ معنی تھاوان آسن۔ یہ چھہ نہ ناممکن زِ ازکۍ کینہہ ناودار کاشرۍ شاعر (بہ زانن اکھ تمۍ سندی وننہ کنۍ) آسن پننہِ نظمہ گۅڈہ انگریزی پاٹھۍ لیکھان تہ پتہ تمن کاشر ترجمہ کٔرتھ بطور کاشر اصل پیش کران۔ یمن شاعرن ہند توجہ چھہ یتھ کتھہِ پیٹھ آسان زِ یہنزِ نظمہِ منز گوژھ نہ تیتھ کانہہ چیز آسن یُس ترجمس منز راوِ۔ یم چھہِ شاعری منز مقامیت بدلہ آفاقیت ژھاران۔ نظم چھیہ تمام مقامی زولانو نشہِ شاعری آزاد کرنچ کوشش۔ چونکہ شعری موسیقی چھہ زبانۍ تہ لسانی آہنگس سیتۍ تعلق، لہذا چھہِ نظم نگارن ہنز اکھ جماتھ اتھ "کنہ سۅکھ” (راہی) ؤنتھ باونہ بدل ہاونس پیٹھ زور دوان۔ یعنی یم چھہ آوازِ کھوتہ زیادہ شکلہِ پیٹھ بھروسہ کران۔ لسانی شکل چھیہ امیج خاص کر بصری امیج۔ آوازِ ہند ترجمہ چھہ ناممکن، شکلہِ ہند ترجمہ چھہ ممکن۔ امہ تبدیلی سیتۍ چھہ شاعری ہند صوتی یا زبانی کردار مٔشرتھ امیک تحریری کردار اہم بنان۔ شاعری چھیہ گیونہ تہ بوزناونہ کھوتہ زیادہ کاغذس پیٹھ پیش کرنک چیز بنان تہ وارہ وارہ سٔنتھ پرنک چیز بنان۔ شاعری چھیہ کنہ کھوتہ زیادہ اچھ ہند معاملہ بنان۔ مقامیت گیہ شاعری منز تم چیز ژھارنۍ یم اکس لسانی ماحولس سیتۍ مخصوص آسن تہ آفاقیت یمو چیزو نش دور روزُن۔

غزل چھہ مقامی شاعری ہنز مثال۔ امیک ترجمہ چھہ ناممکن نے تہ مشکل ضرور، خاص کر ییلہ اتھ منز خیالن یا مضمونن ہندِ سرینرہ بدلہ کیفیت تہ لہجہ کہ مدتہ پرن والۍ سند احساسی تہ فکری ردعمل وتلاونہ آسہِ آمت۔ یتے یوت نہ بلکہ خاص کر ییلہ لفظن منز ایہام یا کثرت معنی پیدہ کرُن مدعا آسہِ۔ غزلس منز چھہ ویسے تہِ شاعرن اکہِ کھوتہ زیادہ معنی ین منز لفظ ورتاونس مزہ یوان۔ امہ شاعری ہند تعریف چھہ فراسٹ سند مقولہ بنان۔ تاہم ونہ بہ واریاہن شعرن ہند ترجمہ چھہ ممکن ییلہ زن اکہ شعرک خیال تُلتھ سہ دویمہ زبانۍ ہندِ مزازہ مطابق لفظ بہ لفظ بدلہ نٔوس شعری اظہارس منز پھرنہ ییہ۔ اتھۍ وون میہ شاعری چھیہ تہِ یہ ترجمس منز راوان تہ لبنہ یوان چھہ۔ مثالہ پاٹھۍ نیتون یہ شعر:

دلبری ہند یہ ما چھہ کانہہ انداز
حال باوُن ہییمے ونکھ تُل تُل

یہ تہِ چھہ بنیادی طور ترجمے مگر یہ چھہ نہ بغیر شاعری، نہ چھہ یہ لفظ بہ لفظ ترجمہ۔ اتھ منز چھیہ نہ شاعری رٲومژ۔ ٹھیک چھہ اتھ منز چھیہ نہ ہوبہو سۅے کتھ تتھے پاٹھۍ آمژ یتھہ پاٹھۍ غالب سندس شعرس منز چھیہ، مگر اتھ منز چھہ غالب سندے خیال نِتھ شعر بناونہ آمت۔ ہوبہو منتقلی چھیہ نہ ترجمہ کیا اکۍ سے زبانۍ منز تہِ ممکن۔ یعنی یہ چھہ نہ ممکنے زِ اکوے شعر کیا ہیکون ہوبہو دویارہ ؤنتھ۔ یعنی اگر زبان تہِ اکاے آسہِ، شاعر تہِ اکوے آسہِ توتہِ چھہ نہ یہ ممکن زِ سہ کیا ہیکہِ کانہہ شعر دوبارہ ہوبہو ؤنتھ۔ گویا یہ چھیہ نہ صرف ترجمچ کمی بلکہ یمہِ کتھہِ ہنز زِ کانہہ تہِ خیال یا تجربہ ہوبہو دہراوُن چھہ نہ ممکن۔ فراسٹ سند مقولہ چھہ اتھ حقیقتس کن تہِ اشارہ۔ کامل سندس شعرس منز چھہ سہ چیز راوان یُس غالب سندس شعرس شعر بناوان چھہ، تاہم چھہ اتھ منز اکھ نوو مگر غالب سندس شعرس سیتۍ ہم آہنگ شعری صورت حال پیدہ گژھان۔ اکھ چیز چھہ راوان مگر اسۍ چھہِ بیاکھ چیز لبان۔ کامل سند بیاکھ شعر چھہ:

گل ورگہ اگر آو تہ کانہہ کانہہ خۅش بخ
کم جان تہ جانانہ چھہِ میژِ تل سۅسرن

یہ خیال چھہ نہ صرف غالب بلکہ تس برونہہ تہِ کٲتہو شاعرو ورتوومت۔ مثلا:
[مثالہ بییہ ساعتہ]

کامل سندس تہ غالب سندس شعرس برونہہ یودوے کتھ اکے چھیہ وننہ آمژ، کانہہ شعر چھہ نہ ہوبہو۔ خۅد خیالس منز چھیہ نہ کانہہ شاعری تکیازِ امہ شعرک مرکزی خیال ہیکون نثرس منز تہِ بیان کٔرتھ، مگر سہ آسہِ نہ شعر۔ شعر چھہ بہرحال زبانۍ ہندس ورتاوس منز۔ غلطی الگ یتھہ پاٹھۍ محمد یوسف ٹینگن غالب سندین شعرن ہندس کامل سندس ترجمس مںز ہاوِ مژہ چھیہ، پرفیکٹ یا مکمل ترجمہ چھہ ناممکن تکیازِ یتھہ پاٹھۍ پیٹھہ کنہِ وننہ آو، وۅپر زبان کیا اکۍ سے زبانۍ منز تہِ چھہ نہ لفظک نعم البدل بیاکھ لفظ موجودے۔ ترجمہ چھہ امپرفیکٹ کار یُس اتھ امپرفیکشنس منزے شاعری پیدہ کران چھہ۔ ترجمہ چھہ نہ نقل بلکہ بدل۔ عام طور یم ترجمہ اسۍ کاشرِ شاعری ہندۍ انگریزی زبانۍ منز کران چھہ، سہ چھہ دراصل اسہِ پننی خاطرہ آسان۔ اسۍ چھن سہ واپس پانے پران حالانکہ ترجمہ چھہ بییس لسانی کلچرس خاطرہ۔ تمن ہندِ خاطرہ گژھہِ سہ قابل قبول آسن۔ سانۍ شاعر چھہ پننین نگارشاتن ہند انگریزی ترجمہ وچھتھ خوش گژھان۔ تمن چھہ باسان امہ سیتۍ ہریوو تہندس کلامس مۅل۔ اصل تہِ چھہ پننسے کلچرس منز ترجمہ تہِ پننسے کلچرس منز روزان۔ امیک چھہ نہ کانہہ مقصد۔ یہ چھہ فن پارہ مۅلناونہ کین غیر ادبی معیارن منز شامل۔

ترجمچ بنیادی ضرورت چھیہ یہ زِ ترجمہ کرن وٲلس گژھہِ تمہِ زبانۍ ہنز سرنۍ واقفیت آسنۍ تاکہ اصلس منز موجود معنی کین تمام رنگن ہیکہِ مدنظر تھٲوتھ۔ یہ چھہ نہ ضروری زِ تمام رنگن گژھہِ سہ کۅم کٔرتھ ہیکُن مگر تمن پیٹھ نظر آسنۍ چھیہ ضروری۔ کاشرۍ ہیکن اردو پیٹھہ جان پاٹھۍ ترجمہ کٔرتھ تکیازِ اسہِ چھیہ اردو زبانۍ پیٹھ جان دسترس۔ اتھ ضرورتس سیتۍ سیتۍ چھہ یہ اصول اہم زِ ترجمہ کرن وول گژھہِ ٹارگیٹ زبانۍ ہند اصلی بولن وول آسن یعنی یہ گژھہِ تسنز مادری زبان آسنۍ۔ مثلا اسۍ ہیکو انگریزی پیٹھہ کاشرس منز ترجمہ کٔرتھ مگر کاشرِ پیٹھہ انگریزی یس منز ترجمہ کرُن چھہ سانہِ خاطرہ مشکل، تکیازِ یودوے اسہِ امہ زبانۍ ہنز بخوبی واقفیت چھیہ، اسہِ چھیہ نہ اتھ پیٹھ تخلیقی طور مادری دسترس، نہ چھہِ امہ کس روزمرہس واقف۔ یہ چھیہ سانہِ خاطرہ اکتسابی زبان۔ ٹارگیٹ زبانۍ منز چھیہ نہ مادری دسترسے یوت ضروری بلکہ گژھہِ موادس سیتۍ تہِ واقفیت آسنۍ۔ مطلب یہ زِ شاعری ہند ترجمہ کرن وول گژھہِ آیڈیلی پانہ شاعر آسن یا کم از کم شاعری ہندس فنس واقف آسن۔ ازکل چھیہ نہ دۅن لسانی کلچرن منز روزن تہ پریتھن والین ہنز کمی۔ یمے ہیکن کامیاب ترجمہ کرن والۍ بٔنتھ۔

اکھ فن پارہ یا شعر اکہِ زبانۍ پیٹھہ بییس زبانۍ منز منتقل کرُن گوو ترجمک عام تہ محدود تصور۔ بیاکھ تصور (میون ذاتی تصور) چھہ سہ یُس محمود گامی، رسول میر تہ تمہ زمانہ کین شاعرن ہنزِ کارکردگی منز نظرِ گژھان چھہ۔ تمو کٔر مخصوص شعرن ہنزِ ترجمہ کاری بجایہ/علاوہ فارسی زبانۍ ہنز شعری روایتے کاشرِ زبانۍ منز منتقل۔ تمو انہِ فارسی شاعری ہنزہ ہیئتہ، لفظیات تہ مضمون تہ تشبیہہ تہ استعارہ، عروضی نظام کاشرس منز۔ یہ چھہ ترجمک اکھ وسیع تر تصور یُس نہ امہ رنگہ شاید کنہِ زبانۍ منز پہچاننہ آمت چھہ۔ امی تصور منزہ چھیہ یہ کتھ نیران زِ کینژن صورت حالن منز کوتاہ اہم تہ ضروری چھہ ترجمہ بنان۔ یہ کتھ تہِ ترجمہ منزہ کتھہ پاٹھۍ چھہ واریاہ کینہہ راورتھ تہِ واریاہ کینہہ لبنہ یوان۔ یہ چھہ اکس سورونس یا اکی سے جایہ بند گمتس یا زمانس سیتۍ قدم نہ تلن وٲلس ادبس نٔو زندگی بخشان۔ میون ترمیم شدہ مقولہ چھہ اتھۍ حقیقتس کن اشارہ کران۔

اگر سنجیدگی سان وچھنہ ییہ تمام ادب چھہ ترجمے، چاہے سہ پتہ بییہ زبانۍ پیٹھہ ٲسۍ تن یا اکی زبانۍ ہندِ اکہ فن پارہ پیٹھہ بییس فن پارس تامک تخلیقی سفر، منتقلی در منتقلی۔ راونچ تہ لبنچ داستان!

٭٭٭٭
پیٹھمہ سطرہ تحریر کٔرتھ سوز میہ فاروق شاہینس رسالہ خاطرہ بدلے کیہہ تام۔ یمہ بہانہ لیوکھ سہ گوو بدل تحریر سیتۍ پورہ۔ مگر کینژس کالس رودس تس پرژھان اگر نہ سوزمت تحریر پسند ییہ بدل کینہہ سوزہ تیلہِ، خیال اوس یمے سطرہ سوزنک۔ تورہ جواب نہ بدل کینہہ سوزو، بدل کینہہ سوز مگر بییہ رود یہ سوزنے، لہذا کھالون بلاگسے۔

غلام نبی آتش سنز کتاب بازیافت

bazyaaft

از شامنس پٔرم غلام نبی آتش سنز کتاب "بازیافت” یتھ منز کینژن پرانین شاعرن پیٹھ تحقیقی مقالہ چھہِ تہ تہندِ کلامک نمونہ چھہ۔ یمن منز چھہِ کینہہ راوۍ متۍ گونماتھ۔ اکثر چھیہ میہ کاشرین کتابن منز صفحہ پتہ صفحہ غلطی میلان۔ یتھ کتابہِ چھہ جان پاٹھۍ پروف پرنہ آمت۔ صرف چھہ کنہِ کنہِ کانہہ کانہہ لفظ شعرن منز غلط چھپیومت۔

کتابہِ منز چھہ عرفی شیرازی سند اکھ شعر یتھہ پاٹھۍ دنہ آمت:

در خونِ جگر عرفی غلط رومی رقصد
در آتشِ خود سوزد پیمانہ چنیں باید

یہ شعر تہِ چھہ بے معنہ تہ بے وزن۔ اصل شعر چھہ:

در خون جگر عرفی غلتد و می سوزد
درآتشِ خود رقصد پروانہ چنیں باید

کتہِ کور چھہ شعر واتناونہ آمت۔ مگر یژھہ غلطی چھیہ اتھ کتابہِ منز نہ آسنس برابر۔ کلیات مہجور چھہ اتھ مقابلہ غلطی ین ہند شرمناک پلندہ۔ تتھ برونہہ کنہِ چھیہ آتش صٲبنۍ کتاب سۅن۔ میہ آیہ اتھ کتابہِ منز پیش کرنہ آمتس کلامس منز تژھہ مثالہ اتھۍ یم میانین کینژن خیالن پشتی کران چھیہ۔ تمہ کنۍ آو کتاب پرنس مزہ۔

اکثر چھہِ یہ شکایت اسۍ بوزان زِ سانین پرانین شاعرن چھہ فارسی عروضس پیٹھ وننہ آمت کلام پھٹان۔ غلام نبی آتش سندین یمن مقالن منز چھہِ تتھۍ شاعر تہِ شامل یمن ہند کلام حیرانگی ہندس حدس تام اکس جایہ تہِ پھٹان چھہ نہ۔ اگر کنہِ جایہ پھٹ سہ چھہ ٹاکارہ پاٹھۍ بیاضن ہندِ نقل تہ زبانۍ روایت چہ کمزوری کنۍ۔ مثلا:

جلال پیرو سیاہی چھاو
سیاہ باغس بر مژراو

جلال الدین نہار (جلال شاہ) چھہ اکثر مقطعن منز پانس "جلہ پیر” ناوہ مخاطب کران۔ اتھ بٲتس منز تہِ چھہ جلہ پیرے مگر کلام پھِرن والیو بنووس جلال پیر۔ امس شاعر سند یوتاہ کلام پیش چھہ کرنہ آمت، تتھ منز چھہ صرف اتھۍ اکس جایہ وزن پھٹان یمہ کنۍ یہ غلطی ٹاکارہ چھیہ۔ اصل شعر چھہ:

جلہ پیرو سیاہی چھاو
سیہ باغس ژہ بر مژراو

یتھے پاٹھۍ چھہ بیاکھ شعر:

جلال پیرو أنس ہاوُن چھہ سر نا محرمس باوُن
چھہ بہتر پان مشراوُن سہ گوو اقرارِ یار اے دل

اتھ شعرس منز چھہ "جلال پیرو” وزنہ نیبر۔ اصل مصرعہ گژھہِ آسن:

جلہ پیرو أنس ہاوُن چھہ سر نا محرمس باوُن

بہ چھس یہ لگاتار ونان زِ پرانین شاعرن ہندس فارسی وزنن پیٹھ وننہ آمتس کلامس چھیہ تقطیع کرنہ بجایہ مطالعہ کرنک ضرورت تہ ورتاوکۍ اصول دریافت کرنچ ضرورت۔ میہ چھیہ اتھ سلسلس منز کٲم کرمژ۔ بازیافت کتابہِ کرِ میہ مزید کینہہ مثالہ دستیاب۔

غلام نبی آتش زندہ باد!