محمد یوسف ٹینگ سندۍ ترت

محمد یوسف ٹینگن چھہ کلیات رسول میرس زیٹھہِ زیوٹھ پیش لفظ لیوکھمت، یتھ منز واریاہ ترت وننہ چھہِ آمتۍ۔ کینژن ہنز نشاندہی چھیہ میہ پتمین پوسٹن منز کرمژ۔

اکس جایہِ چھہ ونان زِ رسول میرن چھیہ کینہہ عجمی تہ فارسی ترکیبہ حافظ، فردوسی تہ نظامی سندۍ پاٹھۍ ورتاومژہ۔ تقریبا اکس صفحس پیٹھ چھہ یمن ترکیبن ہند فہرست دنہ آمت۔ فہرستس منز چھہِ رستم، سام، جمشید تہ منصور ہوۍ لفظ۔ شاید آسہِ ٹینگ یمن سیدین سادن لفظن تہِ ترکیبن منز شمار کران۔ بہرحال، ٹینگ چھہ ژکہِ رسول میرنین فارسی غزلن منز ورتاونہ آمژن ترکیبن ہنز فہرست سازی صفحہ برنہ کہ غرضہ کران۔ یہ ونن زِ تمۍ  چھیہ یم ترکیبہ حافظ، فردوسی تہ نظامی سندۍ  پاٹھۍ ورتاومژہ چھہ ترت۔ کانہہ مثالا چھیہ دنہ آمژ  زِ یم ترکیبہ کتھہ پاٹھۍ چھیہ یمن ترین فارسی شاعرن ہندۍ پاٹھۍ ورتاونہ آمژہ؟ اتہِ نس چھہ سوال یہ تہِ زِ  کیا یم ترکیبہ چھا یمو ترییو فارسی شاعرو اکی طریقہ ورتاومژہ، کِنہ ٹینگ سند مطلب چھہ زِ یم ترکیبہ چھیہ حافظ تہ فردوسی تہ نظامی ین تہِ ورتاومژہ۔ اگر تی مطلب چھہ، کیا باقی کانسہ فارسی شاعرن چھیہ نا یم ترکیبہ ورتاومژہ؟ گیلہ مٲرتھ تمہِ وقتکۍ ادیب مرعوب کرنہ علاوہ گژھہِ نا کتھن کانہہ معنی آسن۔ ترکیبن ہندس فہرستس منز چھہ ماہتاب قندہار تہ آفتاب بلغار تہِ دنہ آمتۍ۔ میہ دی تو ہٲوتھ زِ حافظ، فردوسی، نظامی ہیتھ کمۍ فارسی شاعرن چھیہ یم ترکیبہ ورتاومژہ۔

ونان چھہ "(رسول میر) سندین یمن غزلن منز چھہ فارسی بحر تمہِ آیہ استعمال کرنہ آمتۍ ز یمن ہیکو اسۍ فارسی میزانہ کیو قاعدو سیتۍ تقطیع کرتھ۔”

یہ جملہ کوتاہ مضحکہ خیز چھہ۔ بحرہ نش چھہ امۍ سند مطلب اوزان، بحرس تہ وزنس درمیان کیا فرق چھہ، تہِ چھیہ نہ امس پتاہ۔ بہرحال، فارسی بحر چھا تمہِ آیہ تہِ استعمال کرنہ آمتۍ یمن نہ فارسی میزانہ کیو قاعدو سیتۍ تقطیع ہیکہِ گژھتھ؟ یہ منطق تھاوۍ تو اکتھ کن۔ مثالہ چھہ دوان زہ۔

  • طفل اشکم را غمت گہوارہ جنباں اے صنم
    بحر رمل: فاعلاتن قاعلاتن فاعلاتن فاعلات

اتھ غزلس چھہ نہ ٲخری رکن فاعلات بلکہ فاعلن۔ خبر کمۍ تام چھس یہ غلط لیکھتھ دیتمت، ادہ امۍ تہِ تور تتھے پاٹھۍ۔ بیاکھ مثال چھن یہ دژمژ:

  • دل بندہ دل آزار دل آرام نگارو
    بحر مضارع: مفعول مفاعیل مفاعیل مفعولن

گوڈنچ کتھ چھیہ یہ زِ اتھ وزنس تہِ چھہ ٲخری رکن غلط دوان۔ یہ چھہ نہ مفعولن بلکہ فعولن۔ دویم کتھ چھیہ یہ زِ یہ چھیی نہ مضارع بحرک وزن بلکہ ہزجک۔ یہ تہِ چھس کمۍ تام غلط لیکھتھ دیتمت۔

یہ گیہ ٹینگ سنز عروض دانی۔

کلیات مہجورس منز چھن لیوکھمت زِ مہجورن ورتاوۍ ژھوٹۍ وزن، حالانکہ مہجورنۍ ساری غزل چھہِ ٲٹھ رکنی وزنن منز، یم کُنہِ تہِ اعتبارہ ژھوٹۍ وزن چھہِ نہ۔ ٹینگ چھہ یتھوے مضحکہ خیز بیانو سیتۍ صفحہ بران۔ پرن والین چھیہ نہ اور کن نظر پلان تکیازِ تم چھہِ طرز تحریرن مرعوب کرۍمتۍ۔

سام، دستان،رستم

نذیر آزاد چھہ پننہِ  کتابہِ منز رسول میر سند اکھ شعر یتھہ پاٹھۍ دوان

در جنگ کران کارِ خنجر دستِ رنگیں چانۍ
ہم پنجہ دستاں چھی نہ رستم سام نگارو

ٹینگ تہ شاد چھہِ  غزلہ کس متنس منز "چھی” بدلہ "چھُے” دوان۔ نذیر آزادن کتہِ اۆن یہ "چھی”؟ یہ چھہ دراصل امۍ ٹینگ سندِ کلیات کہ دیباچہ منزہ تلمت۔ ٹینگن چھہ نہ کلیاتک متن پانہ یکجا کۆرمت بلکہ چھیہ بقول کامل بیۍ سنز کٲم پننہِ ناوہ کرنہ آمژ۔ لہذا چھہ متنس منز "چھی” بدلہ ” چھُے” مگر دیباچس منز چھہ پنن "چھی” دوان۔

وۅنۍ ییلہ شعرس منز چھی آو، ہم پنجہ دستاں چھہ نذیر آزادس پریشان کران تکیاز رستم تہ سام چھہِ وۅنۍ ہم پنجہ دستاں۔ تہِ کیا گۆو تہِ معلوم کرنہِ چھہ سہ استادن نش گژھان۔ یم استاد کم چھہِ؟ یہ چھہ اسہِ کاشرین عادتھے زِ کانسہ ہند ناو ہیمو نہ (کیا جان گیوو اگر یمن استادن ہند ناو ہینہ آسہِ ہے آمت، کِنہ تمو اوسس ناو ہینس منع کۆرمت)۔ بہرحال، تم چھس ونان پنجہ دستاں چھہ تتھے پاٹھۍ پنجہ و دستاں یتھہ پاٹھۍ دست و بازو چھہ۔ بقول نذیر آزاد معنی جفۍ تراونۍ۔ یہ/یم استاد ہیکن کانہہ تہِ ٲستھ مگر میہ چھہ پورہ یقین یہ استاد چھہ ٹینگ بییہ نہ کانہہ، تکیازِ ٹینگ نے چھہ ہم پنجہ دستاں پتہ چھی دیتمت۔ چھی یا چھے برونہہ یم تہ لفظ مصرعس منز چھہِ تم چھہِ متعلق فعل بنان، رستم تہ سام چھہِ فاعل۔  لہذا چھہ یم کردار مخاطبس سیتۍ "ہم پنجہ دستاں”۔

ٹینگ چھہ کلیاتس پتہ کنہِ فرہنگ دوان یتھ منز سہ سام سند ناو دوان چھہ مگر نہ چھہ پنجہ و دستاں دوان تہ نہ ژھورے دستاں۔ رستم تہِ چھہ دوان، مگر دستاں چھہ نہ دوان تکیازِ تمس تہِ چھہ نہ معلوم اوسمت زِ یہ دستاں کیا بلایہ چھیہ۔ نتہ اگر امہِ شعرکۍ رستم تہ سام دتِن یم سارنے ویدۍ چھہِ، دستاں کیازِ دیتن نہ؟ سیزے کتھا چھیہ زِ ٹینگن چھہ دستاں لفظک مطلب دست لفظک جمع نمت، یۅس عام کتھ چھیہ۔

ٹینگس چھہ نہ معلوم زِ یہ رسول میرن دستاں چھہ نہ ژھورے دست لفظک جمع بلکہ تمہ علاوہ تہِ معنی تھاوان؟ (معلوم نہ آسن چھہ نہ کانہہ گناہ۔) دستان لفظک معنی چھہ شاد پننس کلیات رسول میرکس فرہنگس اندر دوان۔ مگر سہ چھہ نہ خالص دستاں دوان بلکہ "رستمِ دستاں”۔  معنی چھس ونان رستم سند مول دستاں یمس زال تہِ ونان ٲسۍ۔ صحیح چھہ مگر یہ "رستم دستاں” کتہِ چھہ رسول میرن ورتومت تہِ آو نہ میہ اتھہِ، البتہ ہم پنجہ چھہ شادن ٹینگ سندۍ پاٹھۍ نظر انداز کۆرمت شاید امہ کنۍ زِ ہم پنجہ ترکیب چھیہ نہ معنی یچ محتاج۔ ٹینگ تہِ چھہ نہ یہ ترکیب فرہنگس منزدوان۔ وۅنۍ مانہو زِ ٹینگن تہِ چھہ نہ ہم پنجہ فرہنگس منز امہ کنۍ دیتمت تکیازِ یہ ترکیب چھیہ نہ معنی یچ محتاج، مگر تمۍ سندِ چھی پتہ چھیہ وۅنۍ پورہ ترکیب "ہم پنجہ دستاں” پتھ کن روزان۔ سۅ چھیہ معنی طلب تکیاز ہم پنجہ دستاں چھہ نہ کانہہ محاورہ۔ رسول میر ما گۆو غلط زبان لیکھن وول گونمات چاہے سہ پتہ فارسی یی ٲسۍ تن۔

شاد چھہ اتھ شعرس صحیح پاٹھۍ ووتمت۔ دستاں، رستم تہ سام چھہِ ترین پہلوانن ہندی ناو۔ سام سند نیچو دستان، دستان سند نیچو رستم۔

نذیر آزاد چھہ ونان زِ شادن چھہ دستان لفظک مطلب رستم سند مول دیتمت تہ ڈکشنری منز تہِ چھہ یی، مگر پنجہ و دستان چھہ نہ رد کران حالانکہ تتھ چھیہ نہ نامعلوم استادن الگ ڈکشنری کانہہ مدد کران۔ اگر پنجہ و دستان کانہہ محاورہ آسہِ ہے یتھہ پاٹھۍ دست و بازو چھہ، تیلہ آسہِ ہے یہ کُنہِ ڈکشنری منز ضرور۔

ٹینگ سندس کلیاتس منز چھہ مصرعہ یتھہ پاٹھۍ
ہم پنجہ دستاں چھے نہ رستم و سام نگارو (نہ چھہ نہ زبر ہیتھ بلکہ کاشر زیر ہیتھ یعنی نہٕ)

شاد سندس کلیاتس منز چھہ مصرعہ یتھہ پاٹھۍ
ہم پنجہ دستاں چھے نہ رستم، سام نگارو  (نہ چھہ نہ زبر ہیتھ بلکہ کاشر زیر ہیتھ یعنی نہٕ)

دۅشوے پاٹھ چھہِ صحیح تہ تہ غلط تہ تکیاز دوشونی منز چھہ نہ کاشر زیر ہیتھ یعنی نہٕ۔ آسن گژھہ نہ (زبر ہیتھ)۔ فارسی یس منز چھہ "ہم پنجہ” محاورہ تہ معنی چھس لیکھتھ ہم زور، ہم نبرد، ہم آورد۔  یعنی جنگس منز چھے نہ دستاں، نہ رستم نہ سام برابر۔ نظامی سند شعر چھہ

نہ با شیری کسی را رنجہ دارد
نہ از شیران کسی ہم پنجہ دارد

امی سے شاعر سند بیاکھ شعر چھہ

بہ ہم پنجگی پیل را بشکنم
شہ پیلتن بلکہ پیل افکنم

یہ لیکھ اند واتناونہ برونہہ یم کتھہ:
پنجہ و دستاں چھہ اتھ مصرعس بے آہنگ بناوان، پنجہ ء دستاں تہِ چھہ اتھ بے آہنگ بناوان۔ اتھ وزنس منز چھہ اتہِ نس صرف پنجہ دستاں کُنہِ اصافتہ ورٲے صحیح بیہان۔ لہذا چھہ نہ پنجہ "دستان” لفظس سیتۍ بلکہ "ہم” لفظس سیتۍ تکیاز "ہم پنجہ” چھہ محاورہ۔

ہم دست تہِ چھہ محاورہ، ہم دستاں/ہم داستاں تہِ چھہ محاورہ یمن ہند نہ اتھ مصرعس منز کانہہ جواز چھہ۔ مگر "ہم پنجہ دستاں” چھہ نہ کانہہ محاورہ۔

قاآنی سند اکھ خوبصورت شعر چھہ

خواہی کہ حنا بندی بر کف قدحی گیر
تا سرخ کند عکس میت پنجہ و دستاں

اتھ شعرس منز چھہ نہ پنجہ و دستاں محاورہ رنگۍ بلکہ لغوی معنیس منز اتھہ تہ اونگجہ۔  سلمان ساوجی سند شعر چھہ

بازوی او گاہ بزم با زوی رستم ببست
پنجہ او روز زور پنجہ ء دستاں شکست

اتھ منز چھہ پنجہ ء دستاں مطلب صاف پاٹھۍ رستم سند مول زال۔

پنجہ دستاں کُنہِ اصافت ورٲے چھہ نہ مستعمل۔

شعرس منز چھہ رنگینس مقابلہ سام یمیک معنی سام کردارس سیتۍ سیتۍ کرہن تہِ چھہ یتھہ پاٹھۍ ہندوستانس منز شیام چھہ۔ دست بمقابلہ پنجہ، خنجر بمقابلہ پنجہ لفظن ہند انتخاب چھہ شعرس دلچسپ بناوان۔

اند: محاورہ چھہ نہ "پنجہ و دستاں” بلکہ "ہم پنجہ”۔ اگر پنجہ و دستاں کنی ترکیب مانون، "ھم” لفظ کتھ حسابس تھاوون؟

کاشرین شاعرن منز چھہ نہ فارسی زانن وول رسول میرس مقابلہ کانہہ اوسمت۔ امس چھہ فارسی محاورس پیٹھ زبردست عبور اوسمت۔