گوم تہ گۆوم

میٲنس اکس شعرس پیٹھ (تک بندی پیٹھ) کٔر اکۍ دوستن فیس بکس پیٹھ کمینٹ۔ شعر چھہ

متھ گوۆم لیکھہ غزل از بہ تہِ جانانا ہیو
مصرعہ طرحک چھہ وچھان دولہ میہ مشرانا ہیو

کمینٹ اوس گوم چھہِ ونان، گوۆم چھہِ نہ۔ میہ دوپ بہ ونہ یمن دۅن لفظن ہندس گرامرس متعلق کینہہ کتھہ یم نہ مثلا شفیع شوق سندس یا باقی گرامرن منز وننہ آمژ چھیہ۔ یہ چھہ گرامرک اکھ سبق۔

تم سٲری لفظ (فعل) یم ماضی چہ شکلہِ پیٹھ شخصاونہ یوان چھہِ، تمن منز چھہ عام طور اُم (واحد متکلم سندِ خاطرہ) جوڑنہ یوان۔ مثلا یم لفظ:

کۆر + اُم = کۆرم

بیوٹھ + اُم = بیوٹھم

پۆر + اُم = پۆرم

زول + اُم = زولم

یہ چھہ اصول۔ مگر اصولن چھہِ کینہہ استثنا تہِ آسان۔ وچھوکھ یم لفظ:

گۆو + اُم = گۆوم

آو + اُم = آُووم

دراو + اُم = دراوم

مگر اسہِ چھیہ پتاہ یم چھیہِ نہ صحیح شکلہ۔ یمن ہندِ بدلہ چھہِ گوم، آم تہ درام ونان۔ کیازِ؟ تکیازِ یمن لفظن منز چھہ پیٹھمہِ اصولک استثنا کٲم کران۔ استثنا تہِ چھہ اصولے آسان۔ یعنی اصولس اندر بیاکھ اصول۔ استثنا چھہ زِ یمن لفظن (ماضی فعل) اندس پیٹھ /و/ آواز یوان آسہِ تمن منز چھہ یہ عمل سپدان:

گۆو + اُم = گۆوم  > گۆ (و+ اُ) م > گوم

آو + اُم = آُووم > آ (و+ اُ) م> آم

دراو + اُم = دراوم > درا (و+ اُ) م > درام

یمن لفظن منز چھہ /و/ تہ جوڑنہ ینہ والہِ /اُم/ لاحقہ ہک پیش ،حذف سپدان۔ یم چھہ غیب گژھتھ پتھ کن پننۍ اکھ نشانی تراوان، سہ گۆو یہ زِ اگر لفظس منز ژھۆٹ مصوتہ آسہِ، سہ چھہ زیٹھراونہ یوان۔ اتھ عملس چھہِ صوتیاتس منز فونولاجکل پروسییس تحت مصوتہ زیچھر ونان۔

یمن لفظن ہنز معیاری شکل چھہ گوم، آم، درام بیترِ مگر کنہِ کنہِ ساعتہ چھہِ اسۍ یمن ہنزہ غیر معیاری شکلہ تہِ بوزان۔ میہ ورتٲو پننس شعرس منز یہے غیر معیاری شکل۔ وجہ یہ زِ بہ اوسس اتھ شعرس منز لاپروایی (glibness) پیدہ کرُن یژھان یمہ کنۍ یہ لفظ تہ یہ مضون میہ اۆن۔ گوم بدلہ گۆوم چھہ آکورڈنیسس کن اشارہ یس اتھ شعرس منز غزلہ چہ جذباتیت دور تھاوان چھہ۔ یہ غزل یُس پیروڈی ہند عنصر ہیتھ چھہ، چھہ عام غزلہ چہ نرمی، نزاکژ، رنج تہ افسردگی، تہ ناسٹلجیاہس برعکس۔

عروضی تقلید تہ اجتہاد

image

 

کلامِ مشؔتاق کشمیری

بستی چھُہ کلۍ گنِرا مگر بے سایہ ونے کیا
اڈہ بزۍ کٔرتھ ژُھن سونتھ گریشمنہِ کرایہ ونے کیا

پریتھ پاسہ گٹہ زۆل وۆتھ تہ تُلن واو پھِرُن ڈوٹھ
چھُس گاش ہیتھ اتھۍ منز پکان بے وایہ ونے کیا

تس سیتی چھیم نسبت بہ توے چھس سیٹھا بے باک
عرشک تہ بییہ فرشک چھہ یُس سرمایہ ونے کیا

پاتھل تہ نب دۅشوے چھہِ خلیلس کران آلو
نمرود یمہ وقتکۍ چھہِ نوِ نوِ ترایہ ونے کیا

مۅکھ فطرتک تابندہ درخشان سیٹھا جان
تَمہ نوو تھَن ژُھنتھن ژیہ کٔرتھ ہایہ ونے کیا

یتھ کایناتس ٲس چانی براندہ کنۍ استان
چھیۍ کھوژناوان از ژھرے گگرایہ ونے کیا

کُن کفرکێن کریہنێن اتھن منز مفتیو اسلام
دِلِہ منز چییکھ اتھ سوداہس پیٹھ چایہ ونے کیا

یمہِ دینہ خاطرہ کرۍ صحابو ٹاٹھۍ زو قربان
کُن وعظ خوانو سرۆگ تہ ہیژ ہس لایہ ونے کیا

مشؔتاق میہ وچھمکھ ژہ دۅہے سوزِ جگر ہیتھ
ناحق کران بدنام چھی پریتھ شایہ ونے کیا

 

تقلید

ہزج بحرک اکھ وزن چھہ مفعول مفاعیل مفاعیل فعولن۔

اتھ وزنس چھہ ونان مثمن یعنی 8۔ اتھ وزنس منز چھہِ پورہ شعرس منز 8 رکن آسان۔ فی مصرعہ 4۔ یم 4 رکن چھہِ یم: مفعول (1) مفاعیل (2) مفاعیل (3) فعولن (4)

یم ژۅشوے رکن چھہ امہ بحرہ کہ سالم رکن (مفاعیلن) منزہ مختلف زحافو کنۍ درامتۍ۔

مثمن زیچھرک (یعنی پورہ شعرس منز 8 رکن، اکس مصرعس منز 4) سالم وزن چھہ:

مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن

اتھ مفاعیلن رکنس چھہِ یم زحافہ بنان:

مفعول چھہ خرب زحافہ لاگو کٔرتھ بنان:  مفاعیلن > مفعول

مفاعیل چھہ کف زحافہ لاگو کٔرتھ بنان:  مفاعیلن > مفاعیل

فعولن چھہ حذف زحافہ لاگو کٔرتھ بنان: مفاعیلن > فعولن

(کتھہ چھہِ یم زحافہ بنان تمہ خاطرہ پٔرو کانہہ عروضی کتاب۔)

اصول چھہ گۅڈنیک رکن ہیکہِ صرف مفعول بٔنتھ (مفاعیلن > مفعول)، دویم تہ تریم رکن ہیکن صرف مفاعیل (مفاعیلن > مفاعیل) بٔنتھ، تہ ٲخری رکن ہیکہِ فعولن بٔنتھ (مفاعیلن > فعولن)۔ آخری رکنس پیٹھ چھیہ کینہہ آزادی دنہ آمژہ۔ تتھ پیٹھ چھیہ نہ ییتہ نس کتھ ضروری۔

یۆہے اصول چھہ اتھ وزنس مفعول مفاعیل مفاعیل فعولن منز کارگر۔

اتھ وزنس چھہ پورہ ناو ہزج مثمن اخرب مکفوف محذوف

یعنی وزن چھہ ہزجک، رکن چھس 8 (پورہ شعرس منز)، مصرعک گۅڈنیک رکن چھہ خرب زحافہ (اخرب)، دۆیم تہ تریم رکن چھہِ کف زحافہ (مکفوف) تہ ژورم چھہ حذف زحافہ (محذوف) بنیومت۔

کتابی عروض والین چھہ یُتے پتاہ تکیازِ کتابن منز چھہ یتے لیکھتھ۔
___

 

اجتہاد

ہزج مثمن اخرب مکفوف محذوف

پکیو وۅنۍ وچھو اتھ ناوس سیتۍ کیا تعلق چھہ اتھ غزلس۔

ہزج مثمن ۔ فرض کرو زِ یہ وزن چھہ ہزج بحرک تہ وزن چھس مثمن (8 رکن)۔ یہ ثابت کرنہ خاطرہ کرو اسۍ اتھ غزلس تقطیع۔

اخرب مکفوف محذوف ۔ یہ چھہ امہ بحرک اکھ عام مثمن وزن۔ آہنگ تلہ چھہ باسان زِ اتھ غزلس منز چھہ یۆہے وزن ورتاونہ آمت۔ چلو تقطیع کرو، وچھو سون تُک چھا صحیح۔

تمام مصرعن منز چھہِ گۅڈنکہ رکنہ چہ جایہ ساری لفظ اتھ وزنس پیٹھ کنہِ سقمہ ورٲے برابر یوان۔ مبارک، اکھ قدم کۆر اسہِ طے۔

گۅڈنیک رکن چھہ ہندسن ہنزِ زبانۍ منز 2+2+1 (یعنی 2 آوازہ، 2 آوازہ، 1 آواز)

مثلا:
"بستی چھہ” لفظن ہنز تقطیع: بس (2)+ تی (2)+ چ (1) ۔۔ (مفعول)
"چھہ” کیازِ لیۆکھ میہ صرف چ؟  ژھۅچہ آوازہ (مثلا ییتہِ نس پیش) یمن اعراب ونان چھہِ تہ ھ چھہِ نہ آوازن ہندس حساب کتابس منز مجرا یوان۔

گۅڈنیک رکن آو اسہِ مفعول (اخرب) برابر۔ دۆیم تہ تریم رکن گژھہِ مفاعیل یُن۔ یعنی ہندسن ہندِ مطابق 1+2+2+1

تمام غزلس منز چھہ دۆیمہِ رکنہ چہ جایہ صرف اکس مصرعس منز مفاعیل یوان۔

مشتاق میہ وچھمکھ ژہ

مشتاق 2+2+1 (مفعول) میہ وچھکمھ ژہ 1+2+2+1 (مفاعیل)

تریمہِ رکنہ چہ جایہ چھہ 18 ہو مصرعو منزہ صرف 6 مصرعن منز مفاعیل یوان۔ (تقطیع کرو پانے)

باقی تمام مصرعن منز چھہ دویمہ تہ تریمہ رکنہ چہ جایہ  1+2+2+1 بدلہ 2+2+2+1 یوان۔ لہذا ہیکو اسۍ ؤنتھ زِ یہ غزل چھہ یمن جاین ہزج مثمن اخرب مکفوف محذوف مطابق پھٹان۔ ممکن چھہ یہ ما آسہِ بییہ کنہِ بحرہ کس کنہِ وزنس منز (مثلا مستفعلن مستفعلن بیترِ)۔ بییہ کُنہِ بحرہ کس کُنہِ وزنس کن گژھنہ برنوہہ کرو بییس کتھہِ پیٹھ غور۔ ییلہ اسۍ یہ غزل پران چھہِ تقطیع کرنہ کہ ارادہ ورٲے اسہِ چھہ اتھ منز آہنگ ٹھیک ٹھیک باسان۔ کیا وجہ چھہ؟

دۆیمہ تہ تریمہ رکنہ چہ جایہ یُس اسہ ہندسو مطابق اکثر جاین  2+2+2+1 یوان چھہ، سہ کیا چھہ؟ عروضی ارکانو مطابق کتھہ پاٹھۍ ہیکون اسۍ یہ ہندسہ ترتیب لیکھتھ؟ واریاہ طریقہ چھہ۔ یہ ہیکہِ مفعولات ٲستھ۔ مگر مفعولات چھہ نہ ہزج بحرک کانہہ زحافہ مگر تمام عروضی کتابہ چھیہ ہزج بحرہ کس سالم رکنس 2 درجن پیٹھۍ زحافہ دوان یمن منز اکھ مرکب زحاف مفعولان چھہ۔ یہ مفعولان تہِ چھہ  2+2+2+1 ہندسن برابر۔ گۆو اتھ غزلس منز چھہ دۆیمہ تہ تریمہ رکنہ چہ جایہ 7 جاین مفاعیل مزاحف رکن یوان تہ 29 جاین مفعولان مزاحف رکن یوان۔

اگر ساری عروضی مفاعیلن رکنک اکھ مرکب زحافہ مفعولان دوان چھہِ، امیک ورتاو کونہ چھہ امہ بجرہ کس کنہِ وزنس منز؟ یہ چھا صرف امکان کِنہ اتھ پتہ کنہِ چھیہ عربی زبانۍ ہند کانہہ آہنگ اوسمت۔ تہِ ہیکو نہ اسۍ ؤنتھ، التبہ اگر یہ گنجایش موجود چھیہ، یہ زحافہ کیازِ ییہ نہ کاشرس منز اتھ جایہ جایز ماننہ ییلہ زن یہ سٲنس کاشرس آہنگس زیادہ موافق باسان چھہ؟

مفاعیلن چھہ 7 حرفی رکن ماننہ یوان تہ مفعولان تہ چھہ 7 حرفی رکن۔

مفعولان زحافہ چھہ دۅیو زحافو سیتۍ یکوٹہ بدس یوان، امہ کنۍ چھہ مرکب زحاف۔ خرم تہ تسبیغ ۔

وۅنۍ پکو اسۍ ژورمس رکنس کن۔

12 جاین چھہ اتہِ نس عام پاٹھۍ مستعمل مزاحف رکن فعولن یوان۔ 4 جاین چھہ مزاحف رکن مفاعیل یوان یمچ آزادی چھیہ۔ 2 جاین چھہ مرکب مزاحف رکن مفعولان یوان یمچ ٲخری رکن آسنہ کنۍ آزادی گژھہِ آسنۍ۔

میانہِ یمہ تجزیہ کنۍ ہیکون اسۍ یہ وزن یتھہ پاٹھۍ ظاہر کٔرتھ:

ہزج مثمن اخرب مکفوف/اخرم مسبغ محذوف

یمہ تجزیہ پتہ چھیہ نہ میہ کانہہ ضرورت یہ وزن باقی بحرن منز ژھانڈنک، حالانکہ کینہہ وزن چھہ مختلف بحرن منز آہنگہ لحاظہ ہوی۔

یمہ تجزیہ مطابق گوو یہ ثابت زِ یہ غزل چھہ وزنس منز تہ کنہِ جایہ چھہ نہ پھٹان۔ شاعرن چھیہ شاید کوشش کرمژ مفعول مفاعیل مفاعیل مفاعیل فعولن وزنس پیٹھ غزل وننک مگر کاشرۍ آہنگن چھیہ پانے بدل وتھ کڈمژ یمچ گنجایش ہزج بحرس منز گۅڈے موجود چھیہ، بشرطیکہ عروضی کتابہ طاقچس پیٹھ تھٲوتھ ییہ کتھ کرنہ۔

ٲخرس پیٹھ مشتاق کشیمری سنزِ شاعری پیٹھ۔ میون اکھ دوست وۆتھ "کشیرِ چھہِ زے شاعر پیدہ کرۍ متۍ۔ اکھ مشتاق کشیمری” اگر نہ تمی امہ پتہ امین کامل سند ناو ہیۆتمت آسہِ ہے، بہ ما تراوہس اسُن۔ میہ رۆٹ اسُن اندرے، سوچم میانہِ خاطرہ چھہ میونے مول بۆڈ۔ یوت تام میٲنس مالۍ سند ناو ہیێکھ، میہ نہ کانہہ اعتراض!!!

اکھ مصرعہ بوزو
طالب نہ کانہہ، جالب علم گۆو ضایع ونے کیا

مہجور سند اکھ بند

مہجور سند اکھ بند چھہ کلیات مہجورس منز یتھہ پاٹھۍ درج:

یمبر زلہِ برۍ برۍ تھاوۍ پیمانے
بومبرو سانہِ مہمانے روز
دیدن منز چھسے جاے شیرانے
بلبلہ سندۍ افسانے بوز

"مہمانے روز” لفظن چھہ ترتیب کار نوٹ لیکھان، یتھہ پاٹھۍ: "ابن مہجور سندِ وننہ کنۍ اوس مہجور صٲبن اتھ جایہ روز لفظ بدلہ بوز لیوکھمت۔ تہ تی چھہ وژنہ چہ کلہم قافیہ بندی ہند تقاضہ تہِ۔”

اتھ وژنس چھہِ دویمس دویمس مصرعس منز اتہِ نس وانے بوز، پانے بوز، ترانے بوز، بیانے بوز، دامانے بوز، دہانے بوز لفظ۔ صرف اتھ اکس جایہ کیازِ چھہ مہمانے بوز بدلہ مہمانے روز دنہ آمت۔ یہ چھہ نہ ترتیب کار ونان۔

یہ چھہ دراصل کمۍ تام چالاکن اتہِ بوز لفظکۍ ساری معنی ذہنس منز نہ آسنہ کنۍ لفظہ بدلی کرمژ۔ ترتیب کار سنز کٲم ٲس بٲتچ صحیح شکل محفوظ کرنچ، کِنہ مچھہِ پیٹھ مچھ مارنۍ۔ مہجورن چھہ صحیح لیوکھمت۔ مطلب چھہ "بومبرو بوز”۔ بوز گوو اکھ کنو بوزن، بیاکھ گوو کتھ ماننۍ۔ اتہِ نس چھہ بوز بنیادی طوردویمس معنی یس منز ورتاونہ آمت۔ صحیح مصرعہ گژھہ وژنہ کہ قافیہ نظامہ مطابق یتھہ پاٹھۍ آسن۔

بومبرو، سانہِ مہمانے، بوز

مہمان روزن چھہ نہ کانہہ معنی تھاوان۔ معشوق چھیہ امس پنن بناون یژھان، مہمان نہ۔ یعنی بومبر چھہ سون مہمان تہ امس چھہ درخواست کرنہ یوان زِ سہ بوزِ یمبرزلہِ ہنز کتھ۔ بوز گوو اتہِ نس وصل مراد، ٹھہرنک معنی تہِ چھہ تتھۍ منز۔ عشقس منز چھہ نہ مہمان بناون کانہہ معنی تھاوان بلکہ چھہ پنن بناون معنی تھاوان یعنی کتھ ماننۍ چھہ معنی تھاوان۔ کتھ ماننۍ چھہ ورگہ اظہار وصلک۔

اسونۍ دگ، لندنس منز زامژ اکھ شعرہ سۅمبرن

irshad

ییلہ اسۍ کٲنسہِ تہ شاعر، جدید تر شاعر سنزِ کلہم شاعری ہند تجزیہ کرو، ٲخر چھہِ اسۍ تتھ چیزس تام واتان یتھ اسۍ تمۍ سنزِ شاعری ہند جسٹ ونو۔ یمہ ساعتہ اسۍ ارشاد ملک سنزِ "اسونۍ دگ” شعرہ کتابہِ ہند تجزیہ کرو، امیک جسٹ چھہ نہ کٲنسہِ جدید شاعر سندِ کلہم تاثر نش مختلف۔ یہ چھیہ خوابن ہنز، دۅکھن ہنز، جدایی ہنز تہ راونچ شاعری۔ یہ تاثر چھہ شاعر اکہ بدل وتہِ قایم کران یۅس سانہِ سیاسی تہ کلچرل زندگی پیٹھہ نیران چھیہ تہ تورۍ کن واپس گژھان چھیہ۔

بنیادی طور چھہ ارشاد ملک اکھ کاشر شاعر، یُس نہ صرف غالب کٲشر شعرہ ذاتھ وژن ورتاوان چھہ بلکہ چھہ ازۍکہ زمانہ کین اظہاری ہیتن کن کم توجہ کٔرتھ وقتہ رنگۍ تہِ کاشرین وژن شاعرن سیتۍ پنن رشتہ جوڑان تہ تہندینے طور طریقن پیٹھ پٔکتھ پننین تہ پننہِ قوم کین غمن زیو دنچ کوشش کران۔ امۍ سند وژن ہیکون اسۍ کنہِ تہِ کاشرس وژنس لرِ تھٲوتھ، اکثر جاین چھہ ہیورے پہن۔

میہ باسان لندنس منز بہت یورپی شاعری ہنز تقلید کرنہ بجایہ کاشرین شاعرن تہ شعرہ اظہارن ہنز تقلید چھیہ زیادہ معنی خیز۔ شعرہ سۅمبرنہِ منز چھہ جایہ جایہ ظاہر زِ ارشاد ملک چھہ وژنہ چہ زبانۍ ہند پریہ ون ورتاو کران، تہ امہ کین لوازماتن ہند سیٹھا خیال تھاوان۔

مثالہِ پاٹھۍ یم وژن کٲتیا شوبہ دار چھہِ:
لالہ یکھنا از سون سالے لو
ہی پوشن کریو مالے لو

متہِ ژورِ مو تھاو مارۍ موند پان
ژے میون زو چھکھ ژے میون جان

یم غزل تہِ چھہِ متاثر کن:
پگہہ کہ طمع ہے از مشرووم
راز نو عشقن بووم زانہہ

سیکھ چھیہ نہ ٹھہران زالین منز
اۆش چھہ نہ ٹھہران ٹارین منز

مثالہِ پاٹھۍ یم شعر کٲتیا مارۍ مندۍ چھہِ:
زیٹھہِ کھوتہ زیوٹھ وچھم خواب راتۍ راتس
کلۍ تہریو پیٹھۍ کھوت سہلاب راتۍ راتس

دۅہلہِ ما سنا یم چھہِ مندچھان تاپلس
اوے ما چھم پھۅلان گلاب راتۍ راتس

یہ چھہ معجزک اثر زِ زندہ رودس
لج میہ کمۍ سنز نظر زِ زندہ رودس

میانہِ بدلہ کمۍ سنا دژ گردن
کمۍ سا نومروو سر زِ زندہ رودس

میانی کھورہ تلہ درامژ راتھ
فرشس وہرنہ آمژ راتھ

 

اکھ غزل چھہ پورہ پیش:

ڈیکہ سے پوز چھی ستارے بدل
دریاو سے چھی کنارے بدل
زمینہِ دیت اسہِ وزِ وزِ ساتھ
ٲسۍ آسمانکۍ اشارے بدل
شہل دوان دۅس تاپس منز
رودکۍ مگر اشارے بدل
پوشن چھہِ زندگی کینژن دۅہن
کنڈین مگر گوشوارے بدل
ہارنس پنن چھہ فایدہ الگ
زیننہ نس مگر خسارے بدل
ہوشک بوشا ذہنس منز
آسان دلس چھیہ تارے بدل
ارشاد ہٲل کر سختی وچھ
موتکۍ آسان نظارے بدل

یہ شعرہ کتاب چھیہ کاشرِ آہنگچ اکھ زندہ مثال یمکۍ وژن کیو غزل فارسی عروضس تابع نہ ٲستھ تہِ وزن دار چھہِ۔ میہ چھیہ وۅمید ارشاد ملک سند شعری سفر روزِ جاری تہ امۍ سند شعری کینواس تہِ لبہِ وسعت۔