مہجور سندس مقبرس پیٹھ زہ نظمہ

مہجور سندس مقبرس پیٹھ وننہ آمژہ رحمن راہی تہ غلام نبی خیال سنزہ نظمہ چھیہ میہ برونہہ کنہِ۔ راہی سنز نظم "کنۍ کتھ” تہ خیال سنز نظم "مہجورن مزار”۔ فرق چھیہ یہ زِ خیال چھہ پننہِ نظمہِ منز مہجور سنز ویران قبرہ ہنز حالت وچھتھ پننۍ نظم ونان تہ راہی چھہ مہجور سنز قبر شیرنہ چہ تقریبہِ منز شریک سپدتھ پننۍ نظم ونان۔ مختلف موقعہ ٲستھ تہِ چھہ یمن منز واریاہ ہشر۔ ممکن چھہ اکھ آسہِ بیاکھ ذہنس منز تھٲوتھ وننہ آمژ، کۅس نظم آیہ گۅڈہ تمیک فصیلہ کرن کاشرِ ادبکۍ تواریخ دان (اگر چھہ کانہہ، ٹڈ گرۍ چھہ واریاہ) مگر سۅ کتھ چھیہ نہ تیژ اہم تہِ۔

راہی سنز نظم چھیہ اکھ "نثری”، صحافتی تہ عمومی بیان یُس موزون تہ قافیہ بند کرنہ آمت چھہ۔ یہ چھیہ نہ کنہِ صورژ منز نظم بنان۔ اتھ نظمہ منز وننہ آمژ کتھ چھیہ نہ موزون کلام بننس لایق تہِ۔ میہ چھہ تعجب راہی ین کیا سوچتھ چھیہ یہ موزون کلامی کرمژ؟ 50 پیٹھۍ شعرن منز چھہ اکھ سیٹھا معمولی تہ سطحی کتھ وننہ آمژ یمہ خاطرہ اکھ نثری نوٹ یا رائٹ اپ موزون روزہا۔ موزونے اوت نہ بلکہ کارگر تہِ۔ تمام شعر چھہ سیٹھا سطحی زبان تہ خیالن ہند ورتاو۔ مثلا

ہے بایو کتھ بوزو سا
بانبر کیا چھو روزو سا

بہ تہِ چھس آمت سالے یور
مجلس موکلہِ تہ تراوو دور

تلہ سا بوزو کیا چھہ ونان
لاوڈ سپیکر مۅختہ چھکان

اتھ نظمہ مقابلہ چھیہ خیال سنز نظم تتھ منز پیش کرنہ آمژِ کتھہِ ہندِ حسنہ کنۍ شعری حسن تہِ پیدہ کران۔ خیال سنز نظم چھیہ راہی سندین 50 ہن شعرن مقابلہ 5 ژن شعرن ہنز نظم یۅس اکس سیٹھا فکر انگیز نوٹس پیٹھ ختم چھیہ گژھان:

مشکہ نٲوتھ پانہ گل یمہِ پننہ گلزارکۍ دۅہے
ترووہکھ سرِ راہ کاشرۍ ٲسۍ پردارکۍ دۅہے

نہ صرف چھیہ ظاہری شکلہِ منز خیال سنز نظم ارتکاز پیش کران بلکہ چھیہ تمۍ سنزِ کتھہِ منز تہِ احساس تہ کیفیت کہ لحاظہ اثرانگیزی۔

نظمن ہند ہشر چھہ یتھ کتھہِ منز تہِ زِ ییتہ مہجور سنز قبر وچھتھ خیالس مغلن ہنزِ ملکہ نور جہانس کن منسوب فارسی شعر یاد پیوان چھہ، راہی یس چھہ نند ریوش سند اکھ مصرعہ یاد پیوان۔ دۅشونی نظمن منز مشہور شعر یاد کٔرتھ تمن ہندِ ذریعہ پننہِ کتھہِ ڈۅکھ دین چھہ اہم۔

راہی سنز نظم چھیہ اکھ منافقانہ سیاسی نظم یمیک ادبی مۅل شک آور چھہ ییلہ زن خیال سنزِ نظمہِ منز جذبچ نفاست موجود چھیہ۔

ممکن چھہ میانہِ یمہ نوٹہ کہ بہانہ پرن دوس یمن دۅن شاعرن ہنزہ یم نظمہ۔

مٲلس پیٹھ نظمہ

از کورم مٲلس فون، دوپمس کیا سا ٹھیکھے چھکھہ؟ دوپن ٹھیکھے ہو چھس، یہ چھیم اچھ زال، امی خاطرہ چھس ڈاکٹرس گژھان۔ اچھا بہ نیرے۔ میہ دوپس ادہ کیا نیر، پتہ کرو کتھ۔ کجا پتمہِ ریتہ ہسپتالن منز تہ کجا از اچھ ہندس زالس علاج کرناونہِ نیرن!

میہ چھیہ مٲلس پیٹھ ژور نظمہ یاد پیوان یم میہ سیٹھا پسند چھیہ۔ افسوس زِ یمو منزہ چھیہ نہ کانہہ کٲشر۔ یا تہ چھیہ نہ میہ نظرِ گمژ ، نتہ چھیہ نہ کاشرس منز مٲلس پیٹھ تژھ نظم وننہ آمژ یمۍ بہ متاثر کورمت آسہ۔ تریہ چھیہ انگریزی تہ اکھ اردو۔ گۅڈہ کرن بہ اردو نظم پیش۔ یہ چھیہ عادل منصوری سنز نظم۔ وۅمید چھیم توہہ تہِ ییہ پسند۔

والد کے انتقال پر
عادل منصوری

وہ چالیس راتوں سے سویا نہ تھا
وہ خوابوں کو اونٹوں پہ لادے ہوئے
رات کے ریگ زاروں میں چلتا رہا
چاندنی کی چتاؤں میں جلتا رہا
میز پر کانچ کے اک پیالے میں رکھے ہوئے
دانت ہنستے رہے
کالی عینک کے شیشوں کے پیچھے سے پھر
موتیے کی کلی سر اٹھانے لگی
آنکھ میں تیرگی مسکرانے لگی
روح کا ہاتھ
چھلنی ہوا سوئی کی نوک سے
خواہشوں کے دئے
جسم میں بجھ گئے
سبز پانی کی سیال پرچھائیاں
لمحہ لمحہ بدن میں اترنے لگیں
گھر کی چھت میں جڑے
دس ستاروں کے سایوں تلے
عکس دھندلا گئے
عکس مرجھا گئے

یہ چھیہ مایوس کن نظم مگر میہ چھیہ سیٹھا پسند۔ از نہ بلکہ سیٹھا کالہ پیٹھہ۔ بیاکھ نظم چھیہ ڈلن ٹامس سنز مشہور نظم۔ اتھ نظمہِ منز چھہ موتس سیتۍ مقابلہ آرایی کرنک حوصلہ دنہ آمت۔ نظمہِ ہنز موسیقی چھیہ قابل توجہ۔

Do not go gentle into that good night
Dylan Thomas

Do not go gentle into that good night,
Old age should burn and rave at close of day;
Rage, rage against the dying of the light.

Though wise men at their end know dark is right,
Because their words had forked no lightning they
Do not go gentle into that good night.

Good men, the last wave by, crying how bright
Their frail deeds might have danced in a green bay,
Rage, rage against the dying of the light.

Wild men who caught and sang the sun in flight,
And learn, too late, they grieved it on its way,
Do not go gentle into that good night.

Grave men, near death, who see with blinding sight
Blind eyes could blaze like meteors and be gay,
Rage, rage against the dying of the light.

And you, my father, there on the sad height,
Curse, bless, me now with your fierce tears, I pray.
Do not go gentle into that good night.
Rage, rage against the dying of the light.

تریم نظم چھیہ ڈبلیو ایس مٔروِن سنز، یمیک کاشر ترجمہ میہ نیب 19 ہس منز پیش کورمت چھہ، مگر ییتہ نس دمن اصل انگریزی یس منز۔ اتھ نظمہِ منز چھیہ امس شاعر سنز مخصوص تکنیک ظاہر۔ یہ چھہ نہ کُنہ جایہ خیالن ژھین دوان۔ امہ نظمہِ ہند بیانہ تہِ چھہ دلچسپ۔

Yesterday
W. S. Merwin

My friend says I was not a good son
you understand
I say yes I understand

he says I did not go
to see my parents very often you know
and I say yes I know

even when I was living in the same city he says
maybe I would go there once
a month or maybe even less
I say oh yes

he says the last time I went to see my father
I say the last time I saw my father

he says the last time I saw my father
he was asking me about my life
how I was making out and he
went into the next room
to get something to give me

oh I say
feeling again the cold
of my father’s hand the last time
he says and my father turned
in the doorway and saw me
look at my wristwatch and he
said you know I would like you to stay
and talk with me

oh yes I say

but if you are busy he said
I don’t want you to feel that you
have to
just because I’m here

I say nothing

he says my father
said maybe
you have important work you are doing
or maybe you should be seeing
somebody I don’t want to keep you

I look out the window
my friend is older than I am
he says and I told my father it was so
and I got up and left him then
you know

though there was nowhere I had to go
and nothing I had to do

یمو نظمو کھوتہ زیادہ یۅس نظم میہ پسند چھیہ سۅ چھیہ امریکی افریقی شاعر رابرٹ ہیدن سنز۔ یہ نظم چھیہ گۅڈنچ نظم یۅس میہ مٲلس متعلق پرمژ چھیہ، تیلہ اوسس بہ امریکہ ینے۔ کیا شاندار نظم چھیہ۔

Those Winter Sundays
Robert Hayden

Sundays too my father got up early
and put his clothes on in the blueblack cold,
then with cracked hands that ached
from labor in the weekday weather made
banked fires blaze. No one ever thanked him.

I’d wake and hear the cold splintering, breaking.
When the rooms were warm, he’d call,
and slowly I would rise and dress,
fearing the chronic angers of that house,

Speaking indifferently to him,
who had driven out the cold
and polished my good shoes as well.
What did I know, what did I know
of love’s austere and lonely offices?

اگر کٲنسہ دوستس مٲلس پیٹھ وننہ آمژ کانہہ کاشر نظم یاد آسہِ، تمس چھہ سۅ پیش کرنک درخواست۔

سورے چھہ ہوہک خلل

بہ مچھ آسہ یا موہ
یا لوکہ عرصاتس منز
محض اکھ ژرِ بچہ

میانین پکھن ہند بٍں بٍں
تہ میانین وٹھن ہند گٍں گٍں
چھہ ہوہس منز تیتھے ارتعاش
یُتھ چانہِ نظمہِ ہنزِ
نیکی ہند
تہ چانہِ بلیغ کلامچہ
بلندی ہند

پس میٲنس شورس پیٹھ
پنن زور تھیکن والہِ نیک ارادہ
چانۍ جدوجہد
تہ اصولیات
میون اضطراب
تہ فضولیات

دۅشونۍ ہند معنی چھہ
ہوہہ چین لہرن ہند
اکھ وقتی خلل

پھیکس پیٹھ اتھہ – تریہ واقعہ

مستند تلفظ

آل احمد سرور اوس کشیمر یونیورسٹی ہندِ اقبال انسٹی چیوٹک سربراہ۔ شاید اوس میہ یمن دۅہن یونیورسٹی اندر ایم اے انگلشس منز داخلہ۔ آل احمد سرورن کور اکھ سیمنار منعقد یتھ منز نیبرمین اندرمین سکالرن سیتۍ رشید نازکی صٲبن تہِ مقالہ پور۔ سیمنارس منز ٲسۍ مسعود حسین خان تہ مدعو، یم ٲسۍ میہ علی گڈھہ استاد رودۍ متۍ۔

نازکی صٲبنس مقالس دوران اوسس بہ بۅنہ کنہِ یمنے نش بہت۔ یم ٲسۍ میہ سیتۍ اورچ یورچ کتھا کتھا کران۔ نازکی صٲبن اوس مقالہ پران پران یہ منظر وچھمت۔ سیمنارس ییلہ چایہِ ہندِ خاطرہ بریک میج، نازکی صٲب آیہ میہ نش تہ تھووکھ میٲنس پھیکس پیٹھ اتھہ تہ پرژھکھ ، "ییلہ بہ مقالہ پران اوسس یہ مسعود حسین خان صٲب کیا اوسے ژیہ پرژھان؟”

یمن ٲس نہ خبر زِ خان صٲب اوس میہ استاد۔

بہ اوسس یمن دۅہن رژھ کھنڈ شیطانی منز۔ میہ دوپ یۅہے چھہ موقعہ۔ میہ وونس، "کہنی نہ حض، یم ٲسۍ ونان یہ مقالہ پرن وول کس چھہ تہ میہ وونمکھ یم چھہِ کشیرِ ہندۍ نامور ادیب۔ تورہ حض دوپکھ نہ صرف چھہ یہند مقالہ عالمانہ بلکہ چھہ یہند تلفظ تہِ سیٹھا معیاری تہ مستند۔ میہ چھہ نہ کشیرِ منز یُتھ تلفظ کٲنسہِ وچھمت۔”

میون اوس یہ وننے یوت زِ نازکی صٲبن اون کنے وۅٹہِ میہ ٹیبلہ پیٹھہ چایہ پیالہ تہ دوپکھ، "رٹھ چیہ چاے”۔

اسۍ چھہِ دۅشوے کھڑا کھڑا چاے چیوان زِ نازکی صٲبس پییہ کس تام پیٹھ نظر۔ امۍ تھوو میہ پھیکس پیٹھ بییہ اتھہ تہ نیونس امس شخصس نزدیک تہ پرژھن، "اچھا کیا اوسے ژیہ یہ مسعود حسین خان ونان؟” میہ نی لفظ بہ لفظ پننۍ شیطانی دہرٲوتھ۔

نازکی صٲبن تروو یہ شخص اتی تہ نیونس بییس نفرس کن تہ پرژھن بییہ یۅہے سوال۔ میہ دوپ ہے ہے بہ کیا سا پھسیوس ولٹہ پاٹھۍ۔

امہ پتہ کینژس کالس ییلہ تہِ میہ نازکی صٲب کٲنسہِ شخصس تھی یونیورسٹی منز سمکھہ ہن، تم ٲسۍ میہ یوہے سوال پرژھان!

نازکی صٲبس چھہ پزۍ پاٹھۍ قابل رشک تلفظ!

"وچھ کیا جان!”

بیاکھ شخص یُس یونیورسٹی منز میٲنس پھیکس پیٹھ اتھہ تھاوان اوس، چھہ قاضی غلام محمد۔ فرق ٲس یہ زِ رشید نازکی صٲب ٲسۍ میون سویچ آن کرنہ خاطرہ پھیکس پیٹھ اتھہ تھاوان ییلہ زن قاضی صٲب شاید پنن سویچ آن کرنہ مۅکھہ میٲنس پھیکس پیٹھ اتھہ تھاوان ٲسۍ ۔

ملاقاتس دوران ٲسۍ یم غالب بوزناوان، اکثر فارسی یُس نہ میہ تمن دۅہن زیادہ سمجھ یوان اوس۔ یمن سیتۍ ٲسۍ پننۍ شعر تہِ بوزناوان۔ کتھ یۅس دہراونۍ لایق چھیہ سۅ چھیہ یہ زِ کنہِ تہِ شعرس پیٹھ میانہِ ردعمل برونہے ٲسۍ یم پانے ونان۔ "وچھ کیا جان! وچھ کیا جان! وچھ کیا جان!”

ملاقاتس دوران ٲسۍ یونیورسٹی گراونڈکۍ اکھ زہ چکر لگان یتھ دوران بہ شعرو کھوتہ زیادہ "وچھ کیا جان! وچھ کیا جان!” بوزان اوسس۔ ییژِ لٹہِ سمکھہو نوین شعرن سیتۍ ٲسۍ پرانۍ شعر تہِ بوزنۍ پیوان۔ شاید اوس نہ تمن یادے آسان زِ میہ چھہِ امہ برونہہ تہِ تمن سیتۍ یونیورسٹی گراونڈکۍ چکر لگٲوۍ متۍ۔

قاضی صٲبس ٲسۍ سیٹھا کھسۍ پایہ شعر یاد۔ وچھ کیا جان! وچھ کیا جان!

اور اس کے بعد میں

اکہِ رٲژ سیٹھا ژیرۍ ٲسۍ اسۍ کینہہ نفر زبیر رضوی سندِ گرِ راج باغہ نیرتھ لال منڈی کن پکان۔ میہ چھہ نہ یاد سانہِ اتھ چھۅکہِ منز کُس کُس اوس، البتہ شجاع سلطان اوس تہ تس سیتۍ فاروق آفاق تہِ۔ اسۍ چھہِ کمے پہن کتھہ کران، زیادہ کتھہ اوس شجاع کران۔ پیٹھہ اوس سہ مست۔ تھوون میہ پھیکس پیٹھ اتھہ تہ پرژھن، "پینٹنگہِ منز کس چھہ کشیرِ منز نمبر اول؟” میہ اوس نہ زانہہ امتحان خۅش کران۔ میہ دوپمس پتاہ چھم سا۔ دوپن، کیا سا چھکھ ونان۔ پینٹنگ میں نمبر اول شنتوش ہے۔ جی آر سنتوش۔ میہ تہِ اوس یۅہے ناو ذہنس منز آمت مگر وونمس نہ۔ ونہِ اوس میہ "آ "وننے زِ اتھۍ شہس منز وون امۍ "اور اس کے بعد میں۔”

کینہہ قدم پکٔتھ تہ خلقن پیٹھ تبصرہ کٔرتھ ووتھ یہ بییہ پھیکس پیٹھ اتھہ تھٲوتھ، ” کشیرِ منز کُس چھہ بوڈ شاعر؟” یہ سوال اوس ویسے تہِ مشکل۔ میہ کٔر ژھۅپہ۔ میہ دوپ فاروق آفاق ونیس۔ تمۍ تہِ وونس نہ کینہہ، کنہِ ووننس واریاہ چھہِ، یاد چھم نہ۔ شجاع ووتھ پانے۔ "کامل۔ امین کامل۔” فاروق آفاقن وونس شاید میانہِ مۅکھہ "تتھ کیا شک چھہ۔”

ونہِ اوس تس یہ جملہ ٲسہ منزہ درامتے زِ یہ ووتھ بییہ، "اور اس کے بعد میں۔”

یوتام اسۍ بیون بیون درایہ، امۍ ٲسۍ بییہ تہِ واریاہ "اور اس کے بعد میں” ونۍ متۍ یم وۅنۍ میہ یاد چھہِ نہ، فاروق آفاقس ما آسن یاد!

شجاع سلطان اوس سیٹھا ذہین تہ ہنرمند شخص یمۍ یمن دۅشونی خصوضیژن زیادہ کٲم ہیژ نہ۔

کینہہ دلچسپ واقعہ

مژکری

جوانی ہندین ایامن منز ییلہ کانہہ دوست کنہِ محفلہِ منزسگریٹ ڈبۍ کھولان اوس، سۅ ٲس اکۍ سے منٹس منز خالی گژھان۔ واریاہن اوس محفلن منز سگریٹ ڈبۍ کھولنس کانپھ مگر ٹیٹھ چھیہ ٹیٹھ، یہ کیتس کالس کرِ ژیڈ۔

ہردے کول بھارتی صابن چھہ میہ اکھ واقعہ بوزنوومت۔ دوپن راہی صابن کوڈ ڈبہِ منزہ اکھ سگریٹ تہ ڈبۍ دژن دروازس کن دٲرتھ تہ وونن۔ "اکوے سگریٹ اوس بچوومت۔”

کامل صاب اوس تیلنگہ۔ یہ ووتھ تہ اننۍ یہ سگریٹ ڈبۍ تہ بٲگراونۍ امکۍ سگریٹ سارنے دوستن منز اکہ اکہ۔ راہی رود کیتھ تام ہیو وچھان۔

یمن ہنزِ مژکری ہنز شروعات ما چھیہ سگریٹ ڈبہِ پیٹھے شروع گمژ؟

نٲودس چھٹی

جمہِ پیٹھہ کس مشہور گایک کندن لال سہگلس متعلق چھہ میہ بوزمت زِ تمۍ اوس پورہ زندگی اکوے بوٹھ لوگمت۔ خبر یہ چھا پوز؟

مگر کامل صٲبس متعلق چھیہ یہ کتھ پوز زِ میہ چھہ نہ کامل صٲب زانہے ناید وانس کھسان وچھمت۔ کامل صٲب اوس مستس پتھ کن کنگو کران۔ میہ چھہ سہ واریاہ لٹہِ لۅکچہ قینچی سیتۍ پتۍ کنۍ پانے پنن مس کرپان وچھمت۔

چھو مبارک یہ انجمن سازی
حض کامل چھہ انجمن پانے

کامل سند مطالعہ

کامل صابس چھہِ واریاہ ادیب عالم ونان۔ مگر میہ آو نہ از تام سمجھ زِ یہ علم کتہ اوس امس یوان؟

میہ چھہ نہ کامل صٲب گھرس اندر کنہِ کتابہِ ہند مطالہ کران وچھمت۔ سٲنس گھرس منز ٲس نہ خاص کر انگریزی ادبس متعلق کانہہ کتاب۔ صرف چھیہ میہ زہ تریہ کتابہ نظرِ گمژہ۔ ایسفس فیبلز تہ براون سند فارسی گرامر تہ عروضس پیٹھ داہن وہن ورقن ہنز اخلاق دہلوی سنز کتاب۔ یاتہ چھہ کاملن پنن مطالعہ نوجوانی ہندین دۅہن منز کورمت، نتہ چھہ سہ اکاڈمی منزے یہ کار کران اوسمت۔ کامل صٲبن چھہ افسانہ لیکھن انگریزی ادیب اوہنری یس نش ہیوچھمت، مگر سانہِ گھرِ ٲس نہ کانہہ خاص کر انگریزی یا اردو ادبچ کتاب ماسواے غالب تہ اقبال۔

کامل صابن چھہ نہ پننین تحریرن منز کٲنسہِ انگریزی ادیب سند حوالہ دیتمت۔

کتابہ کیمۍ

کامل صٲبس نش آسہ کاشرین ادیبن ہنزہ واریاہ کتابہ۔ ساری آسہنس پننۍ پننۍ کتاب دوان۔ یم کتابہ آسہ سٲنس دیوان خانس منز اکس بجہ المارِ اندر اکس اکھ پیٹھ۔ بہ اوسس اکثر بہ المارۍ کھولان تہ کانہہ کانہہ کتاب ورق گردانی خاطرہ کڈان۔

یمن کتابن وتھۍ کیمۍ۔ میانہِ ماجہ دوپ امہ ادبہ سیتۍ چھہ گھرس گۅڈے شکس آمت، وۅنۍ ٲسیا یم کاغذ کیمۍ باقی۔ تمو کور فیصلہ زِ یم کتابہ ژھنووکھ ترٲوتھ۔ کامل صابس چلیوو نہ کینہہ۔ شاید ووننکھ ساریۍ نہ، کانہہ کانہہ تھٲوو، مگر تم کتابہ دژہ شکیل الرحمانن محلہ کس اکس وٲنس مفتے کنہ پونسن، پتاہ چھم نہ۔

تیلہ کالہِ اوس تموکھ کتابہ ورقن منز کننہ یوان۔ از تہِ آسہِ۔ تمٲکس بلایہ، مگر یم ورق ٲسۍ مۅللۍ آسان، لوکن ہندس علمس منز اوس (میٲنس تہِ) یمو سیتۍ تہِ سیٹھا اضافہ سپدان۔

بیہ سریہہ مقام

osh

کانہہ تہِ شعر پٔرتھ چھہ ذہنس منز سوال وۅتھنۍ لازمی تہ سوال وۅتھنۍ چھہ جان چیز۔ اگر نہ سوال ووتھ ، یا تہ آسہِ شعر معمولی نتہ آسہِ تمیک مضمون، یا آسن تمکۍ پیکر تہ استعارہ، نتہ آسن تمکۍ الفاظ  تہ زبان ویدۍ۔ اکثر شعر پٔرتھ چھہ نہ میٲنس دلس تہ دماغس کٕتہ کٕتہ تہِ گژھان، مگر کانہہ کانہہ شعر چھہ تھپھ تراوان تہ سوچنس پیٹھ مجبور کران۔ یموے منزہ چھہ شہناز سند یہ شعر :

کۅ پاٹھۍ پیوکھ ژیتس یتھ بیہ سریہہ مقامس پیٹھ
زہ ژور قطرہ اچھن منز میہ ٲسۍ رٲوۍ تمے

یہ شعر چھہ اکس نازک  مقامس یا معاملس کن اشارہ کران۔ امہ کتھہِ ہند چھہ شعرس سننہ برونہے احساس گژھان۔  کۅپاٹھۍ لفظہ سیتۍ چھہ ظاہر زِ امہ شعرک مخاطب یاد پیون چھہ نہ کانہہ خوشگوار واقعہ۔ کۅپاٹھۍ گوو زبردست پاٹھۍ، ژرۍ پاٹھۍ، ولٹہ پاٹھۍ، کنہِ چارہ روس۔ یعنی یاد پینک یہ تجربہ دراو  تکلیف دہ۔ کیازِ؟  امیک جواب چھہ امہ پتے ینہ واجنہِ ترکیبہِ منز۔ "بیہ سریہہ مقام”۔ مقام چھہ  جاے تہِ تہ سفرک یا زندگی ہند کانہہ مرحلہ تہِ۔ سریہہ آسن گوو ماے محبت، لول۔ سۅ جاے تہ سہ مرحلہ یُس ریگستانکۍ پاٹھۍ خشک آسہِ۔ یتھ نہ کانہہ سریہہ آسہِ، یس سریہہ کہ خاطرہ کریشان آسہِ۔ یتھ منز نہ محبت آسہِ بلکہ شاید تمچ کمی یا تمیک ضد، نفرت۔  بیہ سریہہ مقام ترکیب چھیہ مختلف استعاراتی معنین ہنز متحمل۔ بیہ سریہہ مقام چھہ جایہ ہند  تہ وقتک استعارہ تہِ بنان۔ کٲنسہِ ہند یاد پیون، یُس شاید جدا آسہِ گومت،  یا یس سراسر لول اوس، چھہ لازما انسانہ سنزہ اچھ ادراوان۔ کٲنسہِ ہندس یادس منز اوش ہارُن تہ تمہ سیتۍ وقتہ کس کریشونس ریگستانس کانہہ فرق نہ پینۍ بلکہ پننۍ اشۍ  قطرے راوراونۍ  چھہ امہ شعرہ کس واقعس تکلیف دہ بناوان تہ امیک مضمون تہِ مشخص کران۔

زہ ژور قطرہ اچھن منز آسنۍ چھہ یہ اشارہ تہِ کران زِ اوش ہارۍ ہارۍ چھیہ اچھ گۅڈے خشک گمژہ۔ یتھ کتھہِ کن تہِ اشارہ زِ یاد پینہ وٲلس نش یوتاہ ماے محبت تہ سریہہ اوس، تتھ سیتۍ ہمسری چھیہ نہ ممکن۔ یا تہ گژھہِ تیوت سریہہ تہ اوش اچھن منز آسن زِ یہ وقتک صحراو گژھہِ سیراب نتہ راون یم قطرہ تہِ یم کینژن شخصن (مثلا متکلم) سنزن اچھن منز  موجود چھہِ۔ صحراو چھہ تیتھے یتھ اوس، انزہ منزہ اگر روو کینہہ تہ یم پننی اشۍ قطرہ، یم خبر کنہِ مشکل گرِ منز ما یہن پانہ سے بکار۔ انسان چھہ نہ صرف نیبرمس دنیاہس بلکہ پننس پانس تہِ لول وندان۔ کینہہ قطرہ چھہِ پننہ خاطرہ تہِ رژھراونۍ یپوان۔

شعرس منز کتھ چیزس دمو مرکزی اہمیت، کٲنسہِ ہندس یاد پینس، بیہ سریہہ مقامس، کٲنسہِ ہندس اشکۍ قطرہ راورنس؟ معنیچ قطعیت چھیہ سوالن ہند سلسلہ بند کران۔

رفیق رازن نوو قصیدہ

کینہہ ریتھ برونہہ پیوو میہ امین کامل سندس قصیدس اکھ تفصیلی نوٹ لیکھن تکیازِ تتھ متعلق لیکھنہ آمتس اکس مضمونس منز اوس تمیک معنہِ مطلبے غلط سمجھنہ آمت۔ کاشرس منز چھہِ نہ قصیدہ لیکھنہ آمتۍ تہ نہ چھہ سون دور قصیدن ہند دور۔ بقول شفیع شوق تسندس ادبک تواریخس منز چھہ ترجمن ہند ذکر یمن منز بوصیری سند البردہ خاص طور اہم چھہ۔ یمو علاوہ چھہِ رسا جاودانی، امین کامل، رفیق رازن (خبر بییہ تہِ ما آسہِ کٲنسہِ ) اکھ اکھ قصیدہ لیوکھمت۔  

کامل سند قصیدہ چھہ کم و بیش عربی قصیدہ چہ تنظیمہِ ہنز پابندی کران۔ نوۍ مہ صدی منز چھہ ابن قطیبہ "کتاب الشعر والشعرا” ہس منز ونان زِ قصیدہ چھہ ترین حصن پیٹھ مشتمل آسان۔ نصیب، تخلص،تہ ٲخری حصہ یتھ منز فخر یا ہجو یا حکمت آسان چھیہ۔ اسۍ چھہ یم تریشوے عناصر کاملنس قصیدس منز وچھان۔

مۅغلن چھیہ پننۍ ژھاے بہت دۅن چشمن (نصیب)
فن ہاوہ تہ کیا ہاوہ یتھس وقتس ون (تخلص)
شاداب یہ ریشۍ وٲر تہ یم میانۍ سخن (فخر)

کاملنس قصیدس مقابلہ چھہ رفیق رازن بہترین قصیدہ تمۍ سنزِ گۅڈنچہ شعرہ سۅمبرنہ منز درج۔ یہ قصیدہ چھہ امۍ بحضور شیخ العالم لیوکھمت۔ اتھ قصیدس پتہ کنہِ چھہ کامل سنز افکار نظمہ ہند آہنگ الغابہ کنن گژھان، مگر یہ قصیدہ چھہ راز سندِ طرز اداہک اکھ ممتاز تہ بہترین نمونہ۔ میانہ خیالہ چھیہ کامل سند "قصیدہ” تہ راز سند” بحضور شیخ العالم” کاشرِ شاعری ہنزہ زہ اہم نظمہ یم یمن دۅن شاعرن ہندِ تخلیقی قوتکۍ نمونہ چھہِ تہ یمن دۅشونی شاعرن ہنزِ شاعری تہِ واریاہس حدس تام کلہم پاٹھۍ الگ کڈنس منز  مدد کٔرتھ ہیکن۔

بلۍ اچھرہ گیندن میون چھہ اچھرن پھرۍ پھہہ
ژھور میلہِ قلم میون چھہ معنی ورقن
گرمیوس تہ ژلۍ مصلحتن نیرتھ چل
نرمیوس تہ لگۍ ڈیر وتن پیٹھ سخنن
ژھۅکہِ میانۍ فکر روسۍ کچن ڈلہِ رفتار
تھکہِ میانۍ نظر، زون اچھن لگہِ زونن
چھس کنگہ دزاں پانہ تہ پاواں شہلتھ
چھس واوہ ہراں پانہ براں گل ہلمن
یا یکھ تہ وچھکھ میانہِ کلامک ون چھپھ
یا یکھ تہ ژھنڈکھ میانہِ خیالکۍ دٔدون

(قصیدہ، امین کامل)

یا چھی میہ تمے خواب اچھن لارۍ ونیک تام
یاچھس بہ ممت یُتھ یہ جنت گوو میہ عطا ہیو
کژتام اچھر چھم زِ یمن چونہِ جراں چھس
نورٲنۍ علمدارہ میہ باوُن چھہ مدعا ہیو
یا میانۍ کشیرے چھیہ میہ کژ سنگ بنیمژ
یا چھس بہ ظہرۍ روٹہ گومت نیول ہوا ہیو
تھووکھے نہ میہ کن گوش یوتاں ہکۍ تہِ ژھوکییم
وچھہس نہ یوتاں گردِ شروپس وتھرہ صدا ہیو

(بحضور شیخ العالم، رفیق راز)

 ییتہ کامل سندین شعرن منز جلال تہ خۅد اعتمادی چھیہ، تتہ چھیہ راز سندین شعرن منز عاجزی تہ طلب۔ میہ باسان کامل سنزِ شاعری منز چھیہ گرمی تہ راز سنزِ شاعری منز نرمی۔ کامل سنزِ شاعری منز چھہ بہ اہم تہ ژہ چھہ امہ کُے  پرتو، راز سنز شاعری چھیہ برعکس، بہ چھہ ژہ ہک پرتو۔ کامل سند قصیدہ چھہ اکھ خشمہ ہژ شکایت، راز سند بحضور شیخ العالم چھہ اکھ مظلوم آلو۔ کامل سنزِ شکایژ منز چھہ خیر تہ شرک حوالہ، راز سندس آلو منز چھیہ داد تہ بدادچ روداد ۔ دۅشوے شاعر چھہِ اکثر تضاد پیش کران۔ کامل سند تضاد چھہ تکمیلی، راز سند تضاد چھہ تخالفی۔

راز سند  بیاکھ قصیدہ "درمدح وجود” سپد میہ حال حالے مصنف سندِ طرفہ دستیاب۔ قصیدہ چھہ پیش:

قصیدہ در مدح وجود

 رفیق راز

جیرہ ہیو آو سوکوتس وۅں پھرس میٲنس تل
ناگہاں از تہِ ہیوتن روتلہِ وہراون گل
بر زباں چھے میہ شب و روز دعاٖے سیفی
تابعیا بوز ستتھ ساس پیٹھی چھم موکل
تھود تہ بوڈ یوت چھہ بس فیضِ دعاٖے سیفی
تی سپد یی میہ وونم گوو نہ زنہے ادلہ بدل
چھس بہ لب بستہ سخن چھس نہ کراں مصلحتا
یی وناں چھس تہ گژھاں تی چھہ، زباں چھیم کرتل
سلطنت میانہ سکوتچ چھیہ حدو روس تہ انیکھ
اتھۍ اندر گیر گمتۍ اکھ یہ ابد بییہ ہہ ازل
میون قالینہ یہ میژ، تحت سلیماں تہِ کتھا
چھس بہ سلطان سکوتک تہ کھڑا چھِم موکل
میون پِٹھ چھس تہ یہ میژ باج ہیواں اسمانس
میانہ بیمے چھہِ تہہ آب کھٹتھ دشت و جبل
منتظر جن تہ ملک کیتۍ اشارس میٲنس
میون حکمے چھہ شب و روز اناںیم بعمل
میون دستخط نہ یوتاں مِسلہِ پیٹھن سپدِ لگے
در جہاں یی نہ کہنی کٲم توتاں رو بہ عمل
آسہِ بے وونت سمندر تہ کُنُے دام کڈس
آسہِ صحرا تہ کرن غیب یمن پادن تل
اوبرہ لونگ آسہِ گُرکۍ پاٹھۍ کرس زین اتی
وزملا آسہِ اتھن کیتھ بہ تُلن کمچہ بدل
پٲز اسمانۍ وپھاں آسہِ کرس گردنہِ رز
بے وفا دراو اگر جن تہ کرس ہٹۍ ہانکل
نون اگر باوہ تہ برپا چھیہ قیامت سپداں
نون اگر نیرہ تہ ٲنن چھیہ گژھاں عقلہ بقل
سونتھ یی لارِ ہوتُے ناد اگر ہے لایس
یتھ کُلس تل بہ قدم تھاوہ پھلے نیریس جل
گوس ناراض تہ موسم تہِ گژھن بے تاثیر
گوو نہ منشا میہ اگر نیرِ نہ کلۍ شاخن پھل
گلشنس منز چھیہ کراں میون ذکر شاخ بہ شاخ
گیت میانی چھیہ گیواں ماچھ گنس منز یہ نحل
لوگ یمن میانہ اشیک سگ تہ لوبک یوت جہار
تاپہ کراین نہ کہنے جاٖے تمن بونین تل
چھاوہ یود ڈاے اچھر کورہ صفحس، تیمبرِ وۅتھن
شل تہ پل آب گژھن ہاوہ اگر باوژ بل
تاحشر روزِ صحیح ، لیکھہ اگر حرفِ غلط
میون اسلوب جدا میون چھہ انداز نیرل
کاکد اسمان بنی میانۍ اچھر ہے جرہہس
سنکھ اچھرن تہ یہ بتراتھ ژیہ باسی دلدل
تراوہ یود زلف پریشاں بہ اویزاں لفظن
دۅہلہِ کھین دوکھہ تہ پرواز کرن راتہ مۅغل
کم سخن ور چھِہ یواں رٹنہِ میہ نش اچھرہ زکات
ڈیڈِ تل میانہِ گداگر چھِہ صمد میر تہ لل
چھکھ پریشان سیٹھا بوز یہ سر تازہ غزل
در جہاں مسلہ چھہ کُس؟ نیرِ نہ یتھ کانہہ رت حل
کھۅر پکاں رودۍ، یوتامت نہ لگے گوکھ وتُن
مۅل کھساں رود، یوتامت نہ سۅنس گیہ سرتل
کانہہ اگر ٹھک چھہ کراں زورہ پہن دروازس
شورِ محشر چھیہ تلاں پرانہِ زمانچ ہانکل
پانہ سے سیتۍ سخن کر یہ عبادت چھیہ عظیم
پانہ سے سیتۍ شبس روز کراں جنگ و جدل
یم چھیہ کنکریٹ وۅں گوو نیج یوتامت نہ پھٹیکھ
بلبلا یی نہ کہنے پچنہِ یمن دارین تل
ژانگۍ لرزییہ لکو دوپ زِ سحر ووت قریب
کینہہ دپاں واوہ لہر ٲس نژاں شاخن تل
نے کڈِن شاخ نہ برجستہ پھلتھ آو یُہس
یا چھہ ہوکھمت یہ کُلے یا چھہ میہ ہیو اندرہ ہمل
یاد کورمکھ میہ سیٹھا داغ دلکۍ ژلۍ نہ مگر
رود پیوو شرانہِ مگر ووتھ نہ یمن وتھرن مل
یم چھ کینہہ راز میہ کرۍ فاش یمن شعر مہ ون
یم چھ کینہہ لعل کھٹتھ ٲسۍ ہتن پردن تل
ٲخرس منزلِ مقصود طوافک چھہ فنا
روزۍ تن کوت نژاں روزِ یہ بدمست بتل
ٲخرس دی یہ زمیں تیژ دنن ، لرزِ بدن
تھدۍ تہ بڈۍ بام پتھر لاینہ ین براندن تل
چھس نہ پانس تہ گژھاں نظرِ ژیہ کیا ونۍ بہ دمے
چھس بہ فی الحال کھٹتھ پانہ ستن سیندرن تل
عالمس پھیرِ نووُے زو تہ وۅتھیس وترہ بنیل
جاہلس میون عشق میون جنوں باسہِ جہل
تروو گانٹن تہ گریدن لوو بدن ٹکرہ کٔرتھ
چھوو ژھوپ دوپ تہ یہ وٲناکھ رحک گون جنگل
تیتھ شہنشہ بہ یمس زیر نگیں ملک خدا
تیتھ فقیرا بہ میسر نہ یمس ہاکھ وۅپل
وٹھ دزاں چھم تہ سرابس چھہِ وۅتھاں آبہ ملر
سیکھ دزاں آسہِ تہ باساں میہ پدین تل مخمل
تارکھ افتاب تہ مہتاب چھہِ اعراب فقط
میون مصحف چھہ یہ اسمان زمیں میانۍ رحل
میانہِ کوچے چھہ لباں لوکھ خزانن ہند پے
میانۍ دریوزہ گرے درایہ پتو اہل دول
کھۅر چھِہ کھۅربانہ ورٲیی تہِ وتن کنڈۍ چھِہ ؤوِتھ
آو فرمان متس دراو بہ اندازِ رمل
از قصیدا یہ لیکھن اوس میہ در مدحِ وجود
نظمہِ نزدیک اوے پیوو میہ انُن صنفِ غزل

 

یہ گژھہِ یاد تھاوُن کنہِ ساعتہ ہیکہِ اکھ زیوٹھ غزل تہِ قصیدچ شکل رٔٹتھ تہ اکھ قصیدہ تہِ ہیکہِ زیوٹھ غزل بٔنتھ۔ رفیق راز  چھہ تمن کینژنے شاعرن منز یمن زبردست شعرگو ؤنتھ ہیکو، شعر گو مطلب یم اکۍ سے (ردیف) قافیس منز  درجن واد شعر ؤنتھ ہیکن۔ کاشرۍ شاعر چھہِ اکثر اکھ زہ قدم کڈتھے فارمہ رنگۍ تہِ تہ فکری طور تہِ ژھۅکان۔ یہ قصیدہ چھہ بحضور شیخ العالم قصیدکۍ پاٹھۍ تخلیقی وفورچ اکھ زبردست مثال۔

قصیدس منز چھہ راز تیتھ متن تخلیق کران یُس نہ شاعری علاوہ بییہ کانہہ چیز ہیکہِ ٲستھ۔ آہنگ، لفظہ ورتاو،  پیکر تراشی، علامتی مفہوم  ہیکن کنہِ تہِ متنس شعرک درجہ دتھ۔ اتھ منز چھیہ زبانۍ ہنز متاثر کن روانی، استعاراتی اہمیت سیتۍ مملو پیکرن ہنز تخلیقی قوت ظاہر۔ راز سنزِ شاعری ہند سہ پہلو یتھ سریت  تہ حیرت وننہ یوان چھہ یا میانین لقظن منز معجزاتی تجربہ چھہِ یتھ قصیدس منز غالب۔ راز سنزِ شاعری ہندِ حوالہ اتھ قصیدس منز غیر متوقع جلال چھہ دراصل معجزاتی تجربن ہنرِ  پیکر تراشی ہند نتیجہ، یہ چیز چھہ اتھ کامل سنزِ شاعری تہ خاص کر قصیدہ کہ جلالی صورت حال نش الگ کڈان۔ راز سند نفس مضمون چھہ اکثر صورتن منز امی پیکر تراشی ہندِ پونسک دویم پاس۔ یم معجزاتی تجربہ چھہ قصن، داستانن، معجزن، جود ویی منظرن ہند ماحول یا یمن ہندۍ اشارہ قایم کرنہ سیتۍ وجودس منز یوان۔

راز سند یہ قصیدہ چھہ انسانی وجود کس تعریفس منز تہ انسان سندِ متحیر کرن وٲلہِ قوتک تہ امکانن ہند شعری اظہار۔ یہ قوت چھیہ دعاے سیفی کنۍ  یتھ متعلق واریاہ شارح بیان کران چھہ  زِ یہ پرنہ سیتۍ چھہ عجایباتن ہند ظہور سپدان تہ اتھ چھہ حیرت انگیز اثر۔ مصنف چھہ قصیدہ کس اتھ  طلسماتی ماحولس فایدہ تُلتھ  غزل تلنہ برونہہ پننین شعری قوتن تہ امکاناتن ہندس موضوعس کن تہِ پھیران۔ اتھ قصیدس چھہ کامل سندس قصیدس سیتۍ اکھ دلچسپ ہشر یہ زِ دۅشونی منز چھہِ روحانی حوالہ میلان۔ ییتہ راز سندس قصیدس منز دعاے سیفی کین روحانی قوتن ہنز کتھ چھیہ، کامل سندس قصیدس منز چھہ گۅڈنکۍ سے شعرس منز یہ روحانی حوالہ سورة البقرة  کس آیتس کن اشارہ ۔ مۅغلن چھیہ پننۍ ژھانپھ بہت دۅن چشمن۔  تمہ پتہ چھہ یہ روحانی اشارہ  قصیدس منز وسجار لبان۔ امہ سورہ شریفچ تھیم "منکر حق” چھیہ پورہ قصیدک موضوع بنان ۔ دۅشوے مصنف چھہِ روحانی صورت حالس پننس فنس سیتۍ واٹھ دوان۔