پان دپان چھی

نذیر آزادس یہ کینژھا رسول میرنہِ شاعری منز میلان چھہ سہ چھہ تتھ یکدم اردو شاعرن، ہندوستانۍ کلچرس، میر تقی میرس سیتۍ جوڑان۔ لیکھان چھہ:

"رسول میرن چھہ ہندوستانۍ کلچرک اہم عنصر ‘پان’ تشبیہہ رنگۍ استعمال کورمت یتھہ کنۍ یہ لفظ اردو میرن چھہ بییس تناظرس منز ورتوومت۔
رسول میر:
وٹھ چانۍ وۅزلۍ لعل یمن نتہ بدخشان
یم پانۍ پانس رتہ رنگۍ متۍ پان دپان چھی
میر تقی میر:
بیڑے کھاتا ہے تو آتا ہے نظر پان کا رنگ
کس قدر ہائے رے وہ جلد گلو نازک ہے”

نذیر آزاد چھہ دراصل محمد یوسف ٹینگ سنزے کتھ برونہہ پکناوان۔ ٹینگ چھہ ونان:

"رسول میر چھہ عجمی مزازہ باوجود ۔۔۔ ہندوستانۍ دیو مالا تہ تواریخ منز مناسب استعارہ تہ علامژ پہہ اننس منز چھہ نہ کانہہ واے کران ۔۔۔ ‘پان’ لفظک یہ استعمال چھہ نہ کاشرِ شاعری منز تس برونہہ ظاہر کانسہ کورمت۔”

یمن دۅشونی حضراتن کُن چھہ عرض زِ محض یمہ کنۍ ز پان چھہ ہندوستان کہ کلچرک حصہ ہیکو نہ اسۍ ؤنتھ زِ رسول میر کیا اوس ہندوستانۍ شاعرن، میر تقی میر سندین شعرن ہندس پس منظرس منز شعر ونان۔ رسول میر سنزِ شاعری ہند پوت منظر چھہ دراصل فارسی (ایرانی) شاعری۔ یہ پان تہِ چھہ رسول میرن تورے اونمت۔ پان چھہ فارسی شاعری منز تشبیہی تہ استعاراتی لفظیاتک حصہ اوسمت یس رسول میرس برونہہ کنہِ اوس۔ مثلا:

چمن از پان گزیدنت رنگین
غنچہ چون بشکفد گرفتہ اگال
(ظہوری ترشیزی)

یہ وچھوا، پانے اوت نہ بلکہ چھن ہندی لفظ اگال تہ ورتومت۔ وچھو یم تشبیہہ:

بوی گلزار شہادت ہر کہ را بیتاب کرد
چون لب پان خوردہ می بوسد دہان شمشیر را
(صائب تبریزی)

از بہر سرخی لب زخم عدوی او
کافی بود شباہت پیکان بہ برگ پان
(طالب آملی)

نذیر آزاد سند یہ بیان زِ "رسول میر سنزِ شاعری چھیہ سۅ ادبی روایت ڈکھس یۅسہ کینژن نقادن ہندِ مطابق ‘ہند اسلامی کلچرن’ تہ کینژن ہندِ مطابق ‘ہند عرب ایرانۍ کلچرن’ پھانپھلاومژ (چھیہ)” چھہ غلط۔ رسول میرس اوس نہ اوڈ مصرعہ تہِ سیود اردو پاٹھۍ لیکھن تگان، سہ کپارۍ اوس اتھ روایتس فایدہ تلان۔ سانین نفادن یُس اڈگۆر مڈگۆر اردو رسول میرنین کینژن شعرن منز نظرِ گژھان چھہ، سہ چھہ دراصل پنجابۍ یتھ سیتۍ کاشرین اکھ متواتر تعلق اوس۔

یہ تہ چھہ سوال ز رسول میر سندس شعرس منز چھا پان مطلب کھینہ وول پان کنہ جسم، یا سیلف۔

چھے تاج حسنک باج برے

 

نذیر آزاد چھہ رسول میر سندِ اکہ شعرہ کہ تعلقہ  لیکھان:
"بلکہ اوس سہ (رسول میر) تمن لفظن ہند تہِ علم تھاوان یم زہ تہذیبہ رلنہ کس صورتس منز لسانی لین دین کس اصولس تحت فاتح قومہ چہ زبانۍ پیٹھ مفتوحن ہنزِ زبانۍ منز داخل چھہِ گژھان۔ مثلا انگریزۍ لفظ officer اوس تمنے دۅہن لسانی تصرفات  کس اصولس تحت ییتہ چہ تبدیلی سیتۍ "افسر” بٔنتھ اردو زبانۍ منز داخل سپدمت تہ بہادر شاہ ظفر ہوۍ شاعرن اوس ورتوومت
یا مجھے افسر شاہانہ بنایا ہوتا
یا مرا تاج گدایانہ بنایا ہوتا
تہ یوہے لفظ چھہ رسول میر یمہ آیہ شعرس منز استعمال کران
چھے تاج حسنک باج برے راج میہ چھم چون
معشوقہ شبان حسنہ گنجس چھے ژیہ افسری”
(نادر سخن گو، نذیر آزاد)

یمن دوشونی شعرن منز افسر لفظ انگریزی لفظ آفیسر قرار دتھ چھہ نذیر آزاد یمن دۅشونی شعرن مۅلہ والان۔ چونکہ بہادر شاہ ظفر آو معطل کرنہ لہذا چھہ لوکھ اتھ شعرس معمولی تہ واقعاتی معنی کڈان یمیک شکار نذیر آزاد تہِ گۆمت چھہ۔ حقیقت چھیہ یہ زِ یمن دۅشونی شعرن منز چھہ نہ افسر انگریزی لفظ آفیسرچ مقامی شکل بلکہ چھہ یہ قدیم پہلوی لفظ یُس ایرانۍ شاعری منز یسلہ ورتاونہ آمت چھہ۔ امہ لفظک معنی چھہ تاج، کلاہ پادشاہی۔ انگریزی یس منز چھہ یہ لاطینی زبانۍ کہ طرفہ آمت (officium/opificium)۔ یہ آسہِ ہند آریایی لفظ۔ فردوسی چھہ تاج تہ افسر دۅشوے لفظ اکی سے شعرس منز ورتاوان:

جز افسر کہ ہنگام افسر نبود
بدان کودکی تاج درخور نبود
(فردوسی)

وچھوکھ افسر کہ ورتاوکۍ یم پرانۍ فارسی شعر:

بر سرش بر نہاد افسر ملک
زانکہ دانست کیست درخور ملک
(سنایی)

کند را بہ افسر گرامی کند
بدین سر بزرگیش نامی کند
(نظامی)

ز خواب خوش گران شد افسر شاہ
چو خم شد بر کف شب ساغر ماہ
(سلمان ساوجی)

مجازا چھہ افسر حاکم کس معنی یس منز تہِ فارسی شاعری منز ورتاونہ آمت۔

بدو مہراب گفت اے افسر روم
بتو آباد باداین کشور بوم
(سلمان ساوجی)

ظفر سندس شعرس منز چھہ استعاراتی بیان۔ دپان چھہ یا آسہِ ہتھس بہ حاکم بنوومت یعنی سہ تاج یس شاہن چھہ وۅڈِ آسان، نتہ آسہِ ہتھ میون تاج فقیرن ہند تاج بنوومت۔ اکھ فارسی شاعر چھہ ونان

بندہ حضرت شاھی شدم از دولت عشق
کہ گدایان درش افسر شاہانہ زدند
(فروعی بسطامی)

علامہ اقبال چھہ واضح پاٹھۍ ونان

اگرچہ زیب سرش افسرو کلاہی نیست
گدای کوی تو کمتر ز پادشاہی نیست

اردو شاعر شاہ نصیر سند بنم شعر چھہ بہادر شاہ ظفر سندس شعرس مکمل طور واضح کران

کم نہیں ہے افسر شاہی سے کچھ تاج گدا
گر نہیں باور تجھے منعم تو دونوں تول تاج

رسول میر سند شعر چھہ عرفانک شعر۔ امہ شعرہ کس افسری لفظس انگریزی لفظہ کس عام مفہومس سیتۍ واٹھ دتھ چھہ یہ شعر مضحکہ خیز بنان۔ یہ شعر سمجھنہ خاطرہ پریوکھ یم شعر:

سزد اگر ہمہ دلبران دھندت باج
تویی کہ بر سر خوبان کشوری چون تاج
(حافظ شیرازی)

از ہمہ ترکان ستاند ہندوی چشم تو دل
از ہمہ شاہان گرفت شعنہ حسن تو باج
(محتشم کاشانی)

باج برن گوو خراج دین، بڈۍ پادشاہ ٲسۍ لۅکٹین بادشاہن مغلوب کران تہ تمن نش باج حاصل کران۔

راج میہ چھم چون یعنی بہ چھس مغلوب

گنج گۆو خزانہ سیم زر (خاص کر یس ژورِ آسہِ)

افسری گۆو مطلب تاجداری، صاحب افسری۔ تاجدار گۆو پادشاہ یمس نش تاج آسہِ۔

یہ عاشق (مثلا زنانہ، سمجھنہ خاطرہ) چھیہ ونان زِ بہ دمے پننہِ حسنک باج ژیہ تکیازِ ژیہ کٔرتھس بہ مغلوب۔ یعنی میون حسن چھے ژیہ خراج۔ تکیازِ ژیہ نش چھہ حسنہ گنج (حسنک خزانہ یُس نہ ظاہر یا ظاہری چھہ) تہ یہ تاج (میانہِ حسنک تاج) شبی دراصل ژیی۔ اکھ لۅکٹ بادشاہ یتھہ پاٹھۍ مال و زر بڈس پادشاہس باج کس صورتس منز دوان چھہ۔

حسنہ گنج یعنی گپتھ حسن۔ یہ چھہ نہ معشوق سند ظاہری حسن بلکہ حسن مکنونہ۔ عاشق صادقس یعنی پزس عاشقس چھہ نہ ظاہری (پیٹھۍ پیٹھۍ) حسنس منز کانہہ لطف یوان۔

رسول میرن چھہ افسر (اسم) لفظس بییہ قسمک اسم بنوومت یعنی افسری (اسم صفت)۔

 

محقق سنز غلطی تہ محقق سندۍ ترت

غلطی

ناجی منور چھہِ کلیات محمود گامی یس منز "شیرین خسرو” مثنوی ہندس متنس منز اکھ شعر یتھہ پاٹھۍ دوان:

شفیقا خاصہ اوسس ناو شاپور
بخلوت محرم اسرار مستور

شاپور ناوس تل چھہِ اکھ نوٹ یتھہ پاٹھۍ دوان:

"(1) نظامی ین چھہ پننہِ کتابہِ منز "شاور” لیوکھمت، قلمی نسخس منز تہِ چھہ شاور لیکھتھ۔”

مثنوی منز چھہ متنس اندر ناجی گوڈنکس حصس منز شاپور دوان، البتہ چھہ پتمس حصس منز شاپور بدلہ شاور دوان۔ اتھ حصس متعلق چھہ ناجی ونان زِ تم ستہ ہٲٹھ شعر چھہ اڈلیکہِ قلمی نسخہ پیٹھہ نقل کرنہ آمتي۔

ناجی یس چھہ کیاہ تام مغالتہ گومت۔ نظامی سنزِ مثنوی منز چھہ نہ کُنہِ جایہ شاور دتھ بلکہ چھہ شاپور دتھ۔ سے اوس ناو خسرو سندس خاص دوستس۔ یہ شاور کتہِ آو یہ چھہ نہ معلوم۔ ناجی ین کتھ کتابہِ منز چھہ شاور وچھمت، حالانکہ نظامی سنز مثنوی آسہِ یمو پانہ وچھمژ۔

اڈلیکہِ نسخک شارو ہیکہ کاتب سنز غلطی ٲستھ، میہ چھہ باسان یہ لفظ آسہِ کاتبن کنہ بوزمت۔ شاپور بدلہ آسین شاور بوزمت۔

نظامی سنزِ مثنوی منز چھہ یہ ناو گوڈنی اتھۍ شعرس منز یوان یمیک ترجمہ محمود گامی ین کورمت چھہ:

ندیمی خاص بودش نام شاپور
جھان گشتہ ز مغرب تالھاور

ناجی چھہ محقق۔ اگر یژھہ غلطی محققن گژھن، اسہِ مقلدن کیا بنہِ۔

 

ترت

محمد یوسف ٹینگ چھہ اتھ کلیات محمود گامی یس عرض ناشرس منز ونان:

"میانہِ تحقیقہ موحب کٔر تمۍ (محمود گامی ین) فارسی زبانۍ ہنز اکھ مثنوی گوڈنچہ لٹہِ کاشرۍ پاٹھۍ ترجمہ تہ پتہ بۆرن پننہِ زبانۍ ہند ہلم امہ شاندار زبانۍ ہندیو گوہر پارو سیتۍ۔”

یا تہ چھہ نہ یہ جملہ لیکھن تۆگمت۔ حالانکہ کتھ چھیہ نہ فلسفیانہ ز نثر لیکھنس ییہ دقت، نتہ چھہ یہ ٹینگ سند مضحکہ خیز تحقیق۔ اکہ طرفہ چھہ ونان "میانہِ تحقیقہ موجب” یعنی تحقیق چھن کۆرمت تہ بییہ طرفہ چھہ ونان "اکھ مثنوی” یعنی یہ چھیہ نہ پتاہ کۅس مثنوی چھیہ۔  کِنہ یہ چھیہ بلۍ گیلا برونہہ کُن تراومژ تاکہ ینہ خلق ونن زِ محمود گامی یس پیٹھ چھہ صرف ناجی ین تحقیق کۆرمت، تہِ چھہ میہ (ٹینگن) تہِ کۆرمت۔

 

مثنوی ین ہنز گرند

ناجی منور چھہ کلیات محمود گامی یس منز داہ (10) مثنوی دوان۔ امہ برونہہ چھہ رسول پونپر اکس مضمونس منز ونان ز محمود گامی ین چھیہ ٲٹھ نو مثنوی لیچھمژہ۔ امہ برونہہ چھہ محمود احمد اندرابی اکس مضمونس منز لیکھان ز محمود گامی ین چھیہ نو مثنوی لیچھمژہ۔ گویا ناجی منور چھہ کلیات کس دویمس ایڈیشنس منز اکھ مثنوی ژرے دوان۔ مگر کلیات کہ امہ ایڈیشنہ برونہہ چھہ شفیع شوق اکس مضمونس منز ونان ز محمود گامی ین چھیہ کاہ (11) مثنوی لیچھمژہ۔ میہ باسان شوقن چھیہ ٹینگ سنز یہ "تحقیقہ موجب” "اکھ مثنوی” تہِ شمارس تھاومژ، نتہ زن گوژھ سہ پننسے بٲیس پژن۔ حالانکہ "کاشر ادبک تواریخ” کتابہ منز چھن یمن ہند تعداد داہے (10) وونمت۔

 

 

یتھے ما راوِ قرار

 

اوس کیا تہ کوت گوو؟  یوت تام نہ پتاہ لگہِ
پریتھ چیزس نکھہ چھہ بیاکھ چیز روومت باسان
دارِ نش کژتام ژونٹھۍ ٲسۍ  مگر اکھ چھہ غیب
پرژھومکھ یہ بیاکھ ژونٹھ کوت کوروون
وۅشلیہ، پھورکھ نہ جواب

ڈل بٔٹھس پیٹھ ٲسۍ تریہ یار چکرس نیران
مگر از چھہ اکوے پانسے سیتۍ زنتہ روومت
مون بیاکھ چھہ آور، ترییم کوت گوو؟

سڑکہِ پرژھوم تسندۍ پدۍ نشان کتہِ تھٲوتھ
رب آیس متھنہ
نبس پیٹھ ٲس تارکھ مال ونوان
سٲری چھہ پننہِ پننہِ جایہ  تتھے پاٹھۍ یتھہ پاٹھۍ ٲسۍ
مگر ہتہِ ییتہِ چھہ کانہہ کانہہ تارکھ توتہِ کم باسان
گاشس پرژھوم ژیہ ما کانہہ زژ رٲومژ
اوبرہ لنگس تل کھوٹن پان

یتھے ما راوِ قرار!

(منیب الرحمن)